‫اسلم میں جسمانی و ذہنی‬

‫غلمی کے انسداد کی تاریخ‬

‫محمد مبشر نذیر‬
mubashir.nazir@gmail.com
mubashirnazir100@gmail.com

November 2008

‫انتساب‬

‫تاریخ انسانی کے ان افراد کے نام جو انسان کو انسان‬
‫کی غلمی سے نکالنے کی جدوجہد میں مصروف عمل‬
‫رہے۔‬

‫‪2‬‬

‫فہرست‬
‫دیباچ ہ‪14..................................................‬‬
‫حص ہ اول‪ :‬غلمی کا تعارف‪16........................‬‬
‫باب ‪ :1‬غلمی کا تعارف‪17...........................‬‬
‫غلمی کی تعریف‪17............................................................‬‬
‫غلمی کا آغاز‪17.................................................................‬‬
‫غلمی کی اقسام‪18............................................................‬‬
‫غلموں میں اضافے اور کمی کا طریق کار‪18.............................‬‬
‫غلمی کی بنیادی وجوہات‪19..................................................‬‬
‫دور غلمی اور آسمانی مذاہب‪20............................................‬‬
‫غلمی پر ریسرچ کا طریق کار اور اس کے بنیادی اصول‪21............‬‬
‫کتاب کی ترتیب‪23..............................................................‬‬

‫حص ہ دوم‪ :‬زمان ہ قبل از اسلم میں غلمی کی‬
‫تاریخ‪25...................................................‬‬
‫باب ‪ :2‬ایران‪ ،‬یونان‪ ،‬چین‪ ،‬مصر اور ہندوستان‬
‫میں غلمی‪26...........................................‬‬
‫ایران بشمول عراق‪26.........................................................‬‬
‫غلمی س ے متعلق سائرس اعظم کی اصلحات‪27.............................‬‬

‫قدیم یونان‪28....................................................................‬‬
‫چین اور کنفیوشن ممالک‪29..................................................‬‬
‫قدیم مصر‪30.....................................................................‬‬
‫ہندوستان‪31......................................................................‬‬
‫غلمی اور بدھ حکومتیں‪32....................................................‬‬

‫باب ‪ :3‬غلمی اور بنی اسرائیل‪34..................‬‬
‫غلمی سے متعلق تورات کی اصلحات‪35..................................‬‬
‫چ ھ برس بعد غلموں کی آزادی کا قانون‪35....................................‬‬
‫غلم ک ے ازدواجی حقوق‪35........................................................‬‬
‫غلم پر تشدد کی حرمت کا قانون‪36............................................‬‬
‫آزاد شخص کو غلم بنان ے کی ممانعت‪36........................................‬‬
‫مظلوم غلموں کی آزادی کا قانون‪36...........................................‬‬
‫مقروض کو غلم بنا لین ے کی ممانعت‪36........................................‬‬
‫لون ڈیوں کی آزادی س ے متعلق خصوصی اصلحات‪37..........................‬‬

‫‪3‬‬

‫باب ‪ :4‬بنی اسرائیل ک ے دور انحطاط میں‬
‫غلمی‪39.................................................‬‬
‫دور انحطاط میں غلمی سے متعلق احکام میں تحریف‪39.............‬‬
‫انسانی حقوق کو صرف اسرائیلیوں س ے مخصوص کرن ے ک ے لئ ے تورات‬
‫میں تحریف‪39........................................................................‬‬
‫غلموں س ے متعلق قوانین میں ترامیم و اضاف ے‪39............................‬‬
‫حام کی غلمی کا فرضی قص ہ‪40.................................................‬‬

‫تورات میں کی جانے والی تحریفات پر تبصرہ‪41..........................‬‬
‫دور انحطاط میں مبعوث ہونے والے انبیاء کرام کی تنبیہات‪41..........‬‬
‫یہودیوں کے بعد کے ادوار میں غلمی‪42.....................................‬‬

‫باب ‪ :5‬روم میں غلمی‪43............................‬‬
‫سلطنت روما‪ :‬عیسائیت سے پہلے‪43........................................‬‬
‫غلمی کی بدترین مثال‪43.........................................................‬‬
‫غلموں کی بغاوتیں‪44..............................................................‬‬

‫سلطنت روما‪ :‬دور عیسائیت میں‪44........................................‬‬
‫غلموں اور پست طبقات س ے متعلق سیدنا عیسی علی ہ السلم کی‬
‫تعلیمات‪45.............................................................................‬‬
‫عیسائیوں میں بعد ک ے ادوار میں غلمی‪46.....................................‬‬

‫باب ‪ :6‬عرب میں غلمی‪48...........................‬‬
‫غلموں کی حیثیت‪48...........................................................‬‬
‫لونڈیوں کی حالت‪48............................................................‬‬
‫غلموں میں اضافے کا طریق کار‪49.........................................‬‬
‫غلموں کے حقوق و فرائض‪49................................................‬‬
‫عرب میں نیم غلمی‪50........................................................‬‬
‫ولء کا ادارہ‪51...................................................................‬‬
‫غلم کو آزاد کرنے کی صورتیں‪51............................................‬‬
‫خلصہ بحث‪52....................................................................‬‬

‫حص ہ سوم‪ :‬اسلم اور غلمی‪53.....................‬‬
‫باب ‪ :7‬اسلم میں غلموں کی آزادی کی تحریک‬
‫‪54‬‬
‫غلموں کو آزاد کرنے کی ترغیب‪56..........................................‬‬
‫غلمی ک ے خاتم ے کا وژن‪56........................................................‬‬
‫ابتدائی مسلمان اور غلمی‪57.....................................................‬‬
‫غیر مسلم غلموں کی آزادی‪59...................................................‬‬
‫قیمتی غلموں کی آزادی‪60.......................................................‬‬
‫لون ڈیوں کی آزادی‪61................................................................‬‬
‫غلموں کی آزادی میں رسول الل ہ کی ذاتی دلچسپی‪61......................‬‬

‫غلموں کی آزادی کی مثال قائم کرنا‪63...................................‬‬
‫‪4‬‬

‫مکاتبت کے ادارے کا قیام‪64...................................................‬‬
‫مکاتبت ک ے ادار ے کا قانونی تحفظ‪64............................................‬‬
‫غلموں میں نفسیاتی تبدیلی ک ے ذریع ے آزادی کی خوا ہش پیدا کرن ے کی‬
‫کوشش‪66.............................................................................‬‬
‫مکاتبین کی مدد کا نظام‪66........................................................‬‬
‫مکاتب کا قانونی اسٹیٹس‪68......................................................‬‬
‫عدم ادائیگی ک ے باعث مکاتب کا قانونی تحفظ‪69.............................‬‬
‫متعدد مالکوں ک ے مشترک غلم کی مکاتبت‪70.................................‬‬
‫قانون مکاتبت ک ے اثرات‪70.........................................................‬‬
‫مکاتبت کی انشورنس کا نظام‪71.................................................‬‬

‫حکومتی سطح پر غلموں کی آزادی کے اقدامات‪71....................‬‬
‫مذہبی بنیادوں پر غلم آزاد کرنے کے احکامات‪72.........................‬‬
‫قسم توڑن ے کا کفار ہ‪72.............................................................‬‬
‫ناجائز طریق ے س ے طلق دین ے کا کفار ہ‪73.......................................‬‬
‫غلطی س ے کسی کو قتل کر دین ے کا کفار ہ‪73..................................‬‬
‫روز ہ توڑن ے کا کفار ہ‪73..............................................................‬‬
‫سورج گر ہن پر غلموں کی آزادی‪74.............................................‬‬

‫قریبی رشتے دار غلم کی آزادی کا قانون‪74..............................‬‬
‫وصیت کے ذریعے غلموں کی آزادی کا قانون‪75..........................‬‬
‫اسلم قبول کرنے والے غلموں کی آزادی کے اقدامات ‪76..............‬‬

‫باب ‪ :8‬غلموں کا اسٹیٹس ب ہتر بنان ے ک ے‬
‫اقدامات‪80...............................................‬‬
‫غلموں کی عزت نفس سے متعلق اصلحات‪82..........................‬‬
‫غلموں سے حسن سلوک کا حکم‪83........................................‬‬
‫غلموں کی بنیادی ضروریات اور ان پر کام کا بوجھ لدنے کی‬
‫ممانعت‪84........................................................................‬‬
‫غلم کی بنیادی ضروریات‪84......................................................‬‬
‫غلموں پر کام کا بوج ھ لدن ے کی ممانعت‪85....................................‬‬
‫بنیادی ضروریات کی فرا ہمی میں حکومت اور معاشر ے کا کردار‪86.......‬‬
‫غلم کو سات ھ بٹ ھا کر ک ھان ے کا حکم‪87...........................................‬‬
‫غلموں ک ے حقوق اور صحاب ہ کرام کا کردار‪88.................................‬‬

‫غلموں پر ہر قسم کے تشدد کی ممانعت‪89..............................‬‬
‫تشدد زد ہ غلموں کی آزادی کا قانون‪89.........................................‬‬
‫تشدد زد ہ غلموں س ے متعلق صحاب ہ کی حساسیت‪90..........................‬‬
‫غلم پر نفسیاتی تشدد کی ممانعت‪91..........................................‬‬

‫غلموں کے ازدواجی حقوق‪91................................................‬‬
‫غلموں کی شادی کر دین ے کا حکم‪91............................................‬‬
‫طلق کا حق‪92.......................................................................‬‬
‫لون ڈیوں ک ے لئ ے طلق کا حق‪93....................................................‬‬
‫خاندان کو اکٹ ھا رک ھن ے کا حق‪94...................................................‬‬

‫غلموں کے قانونی حقوق‪96..................................................‬‬
‫غلم کی جان کی حفاظت‪96......................................................‬‬
‫مالک پر عدالت میں مقدم ہ کرن ے کا حق‪97......................................‬‬
‫غلموں اور لون ڈیوں کی عزت کی حفاظت‪98.................................‬‬
‫غلم ک ے لئ ے گوا ہی دین ے کا حق‪98.................................................‬‬
‫‪5‬‬

‫غلم ک ے لئ ے دولت کمان ے اور رک ھن ے کا حق‪99..................................‬‬
‫مال غنیمت میں س ے حص ہ‪100.....................................................‬‬
‫وراثت میں حص ہ‪101.................................................................‬‬
‫دینی ذم ہ داریوں میں تخفیف‪102.................................................‬‬
‫جرم کرن ے کی صورت میں نصف سزا‪102.......................................‬‬
‫مسلمانوں ک ے دشمن کو امان دین ے کا حق‪103.................................‬‬

‫غلموں کے سیاسی حقوق‪103...............................................‬‬
‫آقا اور مالک کے تعلقات میں بہتری‪104....................................‬‬
‫غلموں کی خرید و فروخت سے متعلق اصلحات‪105...................‬‬
‫نیم غلم طبقوں کے معاملت میں اصلحات‪107.........................‬‬
‫غربت کا خاتم ہ اور نیم غلم طبق ے کا معاشی استحکام‪108.................‬‬
‫ملزمت میں استحصالی شرائط کا خاتم ہ‪110..................................‬‬

‫سابقہ غلموں اور نیم غلموں کے سماجی رتبے )‪ (Social Status‬میں‬
‫اضافہ‪110.........................................................................‬‬
‫ولء ک ے ادار ے کا استحکام‪110.....................................................‬‬
‫سابق ہ غلموں س ے صحابیات کی شادی ک ے اقدامات‪112.....................‬‬
‫موجود ہ اور سابق ہ غلموں کی امامت‪114.......................................‬‬
‫سابق ہ غلموں س ے برادران ہ تعلقات‪115..........................................‬‬
‫سابق ہ غلموں کا معاشی استحکام‪115..........................................‬‬

‫باب ‪ :9‬لون ڈیوں س ے متعلق خصوصی اصلحات‪....‬‬
‫‪116‬‬
‫قحبہ گری کی ممانعت‪117....................................................‬‬
‫لونڈیوں کو رقص و موسیقی کے لئے استعمال کرنے پر پابندی‪119. . .‬‬
‫لونڈیوں کی شادیاں کر دینے کا حکم‪120...................................‬‬
‫لونڈیوں کی تعلیم و تربیت اور انہیں آزاد کر کے ان سے شادی کا‬
‫حکم‪120..........................................................................‬‬
‫لونڈیوں کے ازدواجی حقوق کا بیوی کے حقوق سے تقابلی جائزہ ‪121.‬‬
‫لونڈیوں کی عفت و عصمت کی حفاظت‪124.............................‬‬
‫ام ولد سے متعلق اصلحات‪125..............................................‬‬

‫باب ‪ :10‬غلموں میں اضاف ے کا سدباب‪127.......‬‬
‫اغوا یا حملہ کر کے غلم بنا لینے پر پابندی‪127............................‬‬
‫جرم کی پاداش میں غلم بنا لینے پر پابندی‪128..........................‬‬
‫لوارثوں کو غلم بنا لینے پر پابندی‪128.....................................‬‬
‫قرض کی عدم ادائیگی پر غلم بنا لینے پر پابندی‪129...................‬‬
‫غربت کے باعث اپنی ذات یا اولد کو فروخت کرنے پر پابندی‪130....‬‬
‫غلموں کی آئندہ آنے والی نسلوں کی آزادی‪131.........................‬‬
‫آقاؤں کی اپنی لون ڈیوں س ے اولد‪132...........................................‬‬
‫آزاد ماں اور غلم باپ کی اولد‪132..............................................‬‬
‫آزاد باپ اور غلم ماں کی اولد‪132..............................................‬‬
‫غلم ماں اور غلم باپ کی اولد‪133.............................................‬‬
‫‪6‬‬

‫باب ‪ :11‬جنگی قیدیوں س ے متعلق خصوصی‬
‫اصلحات‪135............................................‬‬
‫اسلم میں جنگی قیدیوں سے متعلق احکام‪135..........................‬‬
‫جنگی قیدیوں ک ے سات ھ برتاؤ‪135.................................................‬‬
‫جنگ ن ہ کرن ے وال ے غیر مسلموں کو غلم بنان ے کی ممانعت‪136.............‬‬

‫عہد رسالت میں متحارب قوتیں‪137........................................‬‬
‫عہد رسالت میں جنگی قیدی‪138............................................‬‬
‫عہد رسالت کی جنگی مہمات‪139...........................................‬‬
‫ہجرت س ے جنگ بدر کا زمان ہ‪139...................................................‬‬
‫جنگ بدر س ے جنگ احد تک کا زمان ہ‪141..........................................‬‬
‫جنگ احد س ے جنگ خندق تک کا زمان ہ‪142........................................‬‬
‫جنگ خندق س ے صلح حدیبی ہ تک کا زمان ہ‪146.....................................‬‬
‫صلح حدیبی ہ س ے فتح مک ہ تک کا زمان ہ‪149.........................................‬‬
‫فتح مک ہ ک ے بعد کی جنگیں‪151....................................................‬‬

‫عہد رسالت کے جنگی قیدیوں کا تجزیہ‪153................................‬‬
‫خلفت راشدہ کی جنگی مہمات‪154.........................................‬‬
‫انسداد غلمی کی تحریک میں خلفاء راشدین کا کردار اور اس کے‬
‫اثرات‪158.........................................................................‬‬
‫عرب میں غلمی کا مکمل خاتم ہ‪158.............................................‬‬
‫عرب س ے با ہر موجود غلموں س ے متعلق اصلحات‪161.......................‬‬

‫باب ‪ :12‬اسلم کی انسداد غلمی کی م ہم ک ے‬
‫اثرات‪163................................................‬‬
‫غلموں کی آزادی کی تحریک کے صحابہ و تابعین پر اثرات‪163........‬‬
‫ابوبکر صدیق‪163.....................................................................‬‬
‫عمر فاروق‪164.......................................................................‬‬
‫عثمان غنی‪164.......................................................................‬‬
‫علی المرتضی‪165...................................................................‬‬
‫عائش ہ صدیق ہ‪166.....................................................................‬‬
‫دیگر ام ہات المومنین‪167...........................................................‬‬
‫دیگر صحاب ہ‪168.......................................................................‬‬
‫بعد ک ے ادوار میں غلموں کی آزادی کی تحریک ک ے اثرات‪170..............‬‬

‫آزاد کردہ غلموں سے متعلق اعداد و شمار‪171..........................‬‬
‫مک ہ ک ے ر ہن ے وال ے م ہاجر صحاب ہ‪172................................................‬‬
‫انصار مدین ہ‪172.......................................................................‬‬
‫بعد ک ے دور ک ے صحاب ہ‪173...........................................................‬‬
‫تابعین کا دور اول‪173...............................................................‬‬
‫تابعین کا دور ثانی‪173..............................................................‬‬
‫مجموعی نتائج‪173...................................................................‬‬

‫غلموں کے اسٹیٹس میں اضافے کے نتائج‪175.............................‬‬
‫بلل بن رباح رضی الل ہ عن ہ‪176....................................................‬‬
‫سالم مولی ابوحذیف ہ رضی الل ہ عن ہ‪177..........................................‬‬
‫ام ایمن رضی الل ہ عن ہا‪178.........................................................‬‬
‫سلیمان بن یسار رحم ۃ الل ہ علی ہ ‪178..............................................‬‬
‫عکرم ہ مولی ابن عباس رحم ۃ الل ہ علی ہ‪179.......................................‬‬
‫‪7‬‬

‫باب ‪ :13‬اسلم اور نفسیاتی آزادی‪181...........‬‬
‫نفسیاتی غلمی‪ :‬اسلم سے پہلے‪181........................................‬‬
‫فکری آزادی کے معاملے میں اسلم کی اصلحات‪182..................‬‬
‫غور و فکر کی قرآنی دعوت‪182..................................................‬‬
‫آزادی اظ ہار س ے متعلق رسول الل ہ کا طرز عمل‪182..........................‬‬
‫آزادی اظ ہار س ے متعلق خلفاء راشدین کا طرز عمل‪186.....................‬‬

‫حص ہ چ ہارم‪ :‬اسلم ک ے بعد ک ے ادوار میں غلمی‪. .‬‬
‫‪189‬‬
‫باب ‪ :14‬مسلمانوں ک ے دور انحطاط میں غلمی ‪.‬‬
‫‪190‬‬
‫بنو امیہ کے دور )‪(133H / 661 – 750CE – 41‬میں غلمی ‪190.........‬‬
‫بنو عباس)‪ (656H / 750 – 1258CE – 133‬اور بعد کے ادوار میں‬
‫غلمی‪193........................................................................‬‬
‫غلموں پر مشتمل فوج‪193........................................................‬‬
‫بادشا ہ اور امراء ک ے حرم‪197......................................................‬‬
‫مخنث )‪ (Eunuchs‬غلموں پر مشتمل پولیس‪201................................‬‬
‫فوجی جاگیرداری کا نظام‪204....................................................‬‬
‫بادشا ہوں ک ے تقدس کا نظری ہ‪204.................................................‬‬
‫غلموں کی بغاوت‪205..............................................................‬‬

‫سلطنت عثمانیہ )‪ (1341H / 1299 – 1923CE – 698‬میں غلمی‪206. .‬‬
‫غلموں کی بین القوامی تجارت‪207.......................................‬‬
‫غلموں سے متعلق مذہبی راہنماؤں کا کردار‪209.........................‬‬
‫مسلم علماء ک ے چار روی ے‪209.....................................................‬‬
‫غلمی س ے متعلق دینی احکامات میں تحریف‪212.............................‬‬
‫مسلم مصلحین کا غلمی س ے متعلق کردار‪214................................‬‬
‫ابو درداء رضی الل ہ عن ہ‪215.........................................................‬‬
‫عمر بن عبدالعزیز رحم ۃ الل ہ علی ہ‪215.............................................‬‬
‫الجاحظ‪216...........................................................................‬‬
‫ابو یعلی الفراء‪218..................................................................‬‬
‫ابو الحسن الماوردی‪218...........................................................‬‬
‫ش ہوت پرستی ک ے خلف مصروف ج ہاد ا ہل علم‪220...........................‬‬
‫ابو حامد الغزالی‪220................................................................‬‬
‫ابن جوزی‪221........................................................................‬‬
‫عبدالرح ٰمن بن نصر الشیرزی‪222.................................................‬‬
‫ابن الخو ۃ‪223........................................................................‬‬
‫حافظ ذ ہبی‪223.......................................................................‬‬
‫ابن تیمی ہ‪223..........................................................................‬‬
‫ابن قیم‪226...........................................................................‬‬
‫ابن بطوط ہ‪228.......................................................................‬‬

‫مسلم ممالک میں غلموں کی مجموعی حالت‪229......................‬‬
‫مسلم ممالک میں نیم غلمی‪232............................................‬‬
‫خلصہ بحث‪232..................................................................‬‬
‫‪8‬‬

‫باب ‪ :15‬مسلم دنیا میں ذ ہنی‪ ،‬نفسیاتی اور‬
‫فکری غلمی ))‪234...............Intellectual Slavery‬‬
‫مسلم دنیا میں نفسیاتی غلمی کا ارتقاء‪234.............................‬‬
‫اند ھی تقلید‪234......................................................................‬‬
‫استاذ و شاگرد اور مرشد و مرید ک ے نئ ے تعلقات‪240.........................‬‬

‫خلصہ بحث‪246..................................................................‬‬

‫باب ‪ :16‬قرون وسطی ک ے مغربی ممالک میں‬
‫غلمی‪247...............................................‬‬
‫قدیم یورپ میں غلمی‪247...................................................‬‬
‫مذہبی بنیادوں پر غلمی‪249..................................................‬‬
‫ی ہودیوں کی غلمی‪249.............................................................‬‬
‫مسلمانوں کی غلمی‪250..........................................................‬‬

‫اہل مغرب کی مذہبی و نفسیاتی غلمی‪251...............................‬‬
‫انکوئزیشن ک ے ادار ے کا قیام‪251..................................................‬‬
‫اسپین میں انکوئزیشن کا ادار ہ‪257...............................................‬‬

‫افریقی غلموں کی اٹلنٹک تجارت‪258.....................................‬‬
‫کالونیل ازم‪261..................................................................‬‬
‫قرون وسطی کے مسلم معاشروں میں موجود غلمی کا مغربی‬
‫غلمی سے تقابلی جائزہ‪262..................................................‬‬

‫حص ہ پنجم‪ :‬غلمی اور دور جدید‪266................‬‬
‫باب ‪ :17‬غلمی ک ے خاتم ے کی عالمی تحریک ‪267‬‬
‫یورپ میں آزادی فکر کی تحریک‪267.......................................‬‬
‫کیپیٹلزم اور غلمی ‪268.......................................................‬‬
‫کمیونزم اور غلمی‪269........................................................‬‬
‫جدید مغربی دنیا میں غلمی کے خاتمے کی تحریک‪270.................‬‬
‫جدید مسلم دنیا میں غلمی کے خاتمے کی تحریک‪274..................‬‬
‫عہد رسالت اور جدید مغربی معاشروں میں غلموں کی آزادی کی‬
‫تحریک کا تقابلی جائزہ‪279...................................................‬‬
‫مغربی اور مسلم معاشروں میں غلمی کے خاتمے کی تحریک کا‬
‫تقابلی جائزہ‪280.................................................................‬‬

‫باب ‪ :18‬موجود ہ دور میں جسمانی غلمی اور‬
‫اس کا سدباب‪282......................................‬‬
‫غلمی کی مخفی صورتیں‪283...............................................‬‬
‫غیر قانونی غلمی‪283..............................................................‬‬
‫جاگیرداران ہ غلمی‪286..............................................................‬‬
‫سرمای ہ داران ہ غلمی‪286............................................................‬‬
‫‪9‬‬

‫جیل ک ے قیدیوں کی غلمی‪288...................................................‬‬

‫مخفی غلمی کے خاتمے کا طریق کار‪288.................................‬‬
‫انسانی حقوق ک ے لئ ے مذ ہبی طبق ے کی بیداری‪289...........................‬‬
‫آزادی فکر کا فروغ‪291.............................................................‬‬
‫سول سوسائٹی کا کردار‪291......................................................‬‬
‫سیکس ایجوکیشن‪293..............................................................‬‬
‫کرپشن کا خاتم ہ‪293.................................................................‬‬
‫غربت کا خاتم ہ‪294...................................................................‬‬
‫انارکی اور جنگ کا خاتم ہ‪294......................................................‬‬
‫سماجی امتیاز کا خاتم ہ‪298........................................................‬‬
‫قانونی نظام کی اصلح‪298.......................................................‬‬
‫سیکس ورکرز س ے متعلق اصلحات‪298..........................................‬‬

‫باب ‪ :19‬موجود ہ دور میں نفسیاتی غلمی ‪299..‬‬
‫فکری غلم بنائے جانے کا طریق کار‪299....................................‬‬
‫مذ ہبی را ہنما کو مقدس بنائ ے جان ے کی م ہم‪300................................‬‬
‫مقربین خاص کی ٹیم کی تیاری‪301.............................................‬‬
‫مذ ہبی را ہنماؤں کا ظا ہری مشن اور خفی ہ ایجن ڈا‪301..........................‬‬
‫اپن ے پیغام کو خدا کا پیغام بنا کر پیش کرن ے کا عمل‪302.....................‬‬
‫علم دین پر اجار ہ داری‪302.........................................................‬‬
‫عقل ک ے استعمال کی حوصل ہ شکنی‪303........................................‬‬
‫اختلف رائ ے کی مخالفت‪303......................................................‬‬
‫"مخالفین" کی تخلیق‪304..........................................................‬‬

‫برین واشنگ کا عملی نظام‪304.............................................‬‬
‫تربیتی نشستیں ‪304................................................................‬‬
‫خاص مبلغین ک ے بیانات ‪304.......................................................‬‬
‫مکمل معلومات کی عدم فرا ہمی‪304............................................‬‬
‫سماجی ری انفورسمنٹ )‪ (Social Reinforcement‬اور جذباتی بلیک میل ‪305.‬‬
‫عقل کی بجائ ے جذباتیت کو اپیل ‪305............................................‬‬
‫ا ہم لوگوں س ے خصوصی ملقات ‪306............................................‬‬
‫وفاداری کا امتحان ‪306.............................................................‬‬
‫نام کی تبدیلی ‪306..................................................................‬‬
‫سوالت کی حوصل ہ شکنی ‪306....................................................‬‬
‫معاشر ے س ے قطع تعلق ‪307.......................................................‬‬
‫مخصوص وضع قطع‪307............................................................‬‬

‫برین واشنگ کے لئے مذہب کا استعمال‪307...............................‬‬
‫خدا اور بند ے ک ے درمیان واسط ے کا تصور ‪307.................................‬‬
‫اطاعت امیر کی احادیث کا استعمال ‪308.......................................‬‬
‫جنت اور ج ہنم ک ے عقید ے کا استعمال‪308.......................................‬‬
‫اعتراف اور توب ہ‪309.................................................................‬‬
‫روحانی تجربات ‪309................................................................‬‬

‫نفسیاتی غلمی کی اگلی نسلوں کو منتقلی‪310.........................‬‬

‫باب ‪ :20‬نفسیاتی غلمی کا سدباب‪311...........‬‬
‫آزادی فکر کی تحریک‪311.....................................................‬‬
‫اسلمی اور مغربی آزادی فکر میں فرق‪312...................................‬‬
‫آزادی فکر ک ے لئ ے درکار عملی اقدامات‪313....................................‬‬

‫‪10‬‬

‫مخلص اور مفاد پرست مذہبی راہنماؤں میں فرق کرنے کی صلحیت‬
‫‪313‬‬
‫نظام تعلیم میں درکار اصلحات‪317........................................‬‬
‫عربی کی تعلیم‪318.................................................................‬‬
‫قرآن کو دینی تعلیم کا محور بنان ے کی ضرورت‪318..........................‬‬
‫حدیث کی تعلیم میں نقد حدیث اور سیاق و سباق کی ا ہمیت‪319.........‬‬
‫تقابلی مطالع ے کا طریق تعلیم‪320...............................................‬‬
‫جدید دنیاوی علوم کی تعلیم‪321..................................................‬‬
‫دینی تعلیم کی آن لئن سرٹیفیکیشن کا نظام‪321............................‬‬

‫ڈی کنڈیشنگ کا عمل‪322......................................................‬‬
‫ڈی کن ڈیشنگ‪ :‬نفسیاتی غلم کی آزادی کا عمل‪322...........................‬‬
‫ڈی کن ڈیشنگ س ے متعلق داعی حق کا کردار‪324................................‬‬
‫ڈی کن ڈیشنگ ک ے بعد ک ے نفسیاتی اتار چڑ ھاؤ‪326..............................‬‬

‫حص ہ ششم‪ :‬اسلم اور غلمی س ے متعلق جدید‬
‫ذ ہن ک ے شب ہات‪327.....................................‬‬
‫باب ‪ :21‬اسلم اور غلمی س ے متعلق فلسفیان ہ‬
‫اور تاریخی سوالت‪327...............................‬‬
‫فلسفیانہ سوالت‪328...........................................................‬‬
‫انسان‪ ،‬اپن ے جیس ے انسان کو غلم بنانا کیوں چا ہتا ہے؟‪328..................‬‬
‫کیا قرآن غلمی کو فطری قرار دیتا ہے؟‪328..................................‬‬
‫قرآن ن ے غلمی کو برائی قرار کیوں ن ہیں دیا؟‪330............................‬‬

‫تاریخی سوالت‪331............................................................‬‬
‫کیا اسلم ن ے غلمی کو باقاعد ہ ایک سماجی ادار ے کی شکل دی ہے؟ ‪331.‬‬
‫رسول الل ہ صلی الل ہ علی ہ و ٰال ہ وسلم ن ے لوگوں کو اپنی ذاتی غلمی میں‬
‫کیوں رک ھا؟‪331.......................................................................‬‬
‫اسلم ن ے غلمی کو ایک دم ختم کیوں ن ہیں کیا؟‪332..........................‬‬
‫اسلم ن ے غلموں کی خرید و فروخت پر مکمل پابندی عائد کیوں ن ہیں‬
‫کی؟‪333...............................................................................‬‬
‫اسلمی تاریخ میں جنگی قیدیوں کو غلم کیوں بنایا گیا؟‪335..............‬‬
‫ع ہد رسالت میں بنو قریظ ہ کو غلم کیوں بنایا گیا؟‪340......................‬‬
‫کیا ع ہد رسالت میں چند غلموں کی آزادی کو منسوخ کیا گیا ت ھا؟‪342....‬‬
‫کیا ع ہد رسالت میں ام ولد کی خدمات کو منتقل کیا جاتا ت ھا؟‪344........‬‬
‫کیا وج ہ ہے ک ہ اسلم کی اصلحات ک ے باوجود‪ ،‬مسلم تاریخ میں غلمی کا‬
‫ادار ہ بڑ ے پیمان ے پر موجود ر ہا؟‪348...............................................‬‬
‫کیا وج ہ ہے ک ہ مسلم تاریخ میں لون ڈیوں کو کثرت س ے سیکس ک ے لئ ے‬
‫استعمال کیا گیا؟‪349...............................................................‬‬
‫مسلم مصلحین ن ے امراء ک ے حرم اور خواج ہ سرا پولیس ک ے اداروں ک ے‬
‫خلف مزاحمت کیوں ن ہیں کی؟‪351..............................................‬‬
‫کیا وج ہ ہے ک ہ مسلمانوں ک ے ہاں نفسیاتی غلمی بڑ ے پیمان ے پر موجود‬
‫ر ہی ہے؟‪352...........................................................................‬‬
‫اس کی کیا وج ہ ہے ک ہ بعض مستشرقین ن ے اسلم کو غلمی کا حامی‬
‫قرار دیا ہے؟‪352......................................................................‬‬

‫غلمی کے خاتمے سے متعلق سوالت‪355..................................‬‬
‫کیا وج ہ ہے ک ہ موجود ہ دور میں غلمی ک ے خاتم ے کی تحریک کا آغاز‬
‫مسلمانوں کی بجائ ے ا ہل مغرب کی طرف س ے ہوا؟‪355......................‬‬
‫‪11‬‬

‫کیا وج ہ ہے ک ہ مسلمانوں ک ے ہاں آزادی فکر کی تحریک ا ہل مغرب کی‬
‫نسبت ب ہت کمزور ہے؟‪355..........................................................‬‬
‫کیا موجود ہ دور میں مسلمان غلمی ک ے دوبار ہ احیاء ک ے قائل ہیں؟‪357...‬‬

‫باب ‪ :22‬اسلم اور غلمی س ے متعلق فق ہی اور‬
‫قانونی سوالت‪360....................................‬‬
‫فقہ سے متعلق چند بنیادی مباحث‪360......................................‬‬
‫شریعت اور فق ہ میں فرق‪360.....................................................‬‬
‫فق ہ ک ے مآخذ‪360.....................................................................‬‬
‫ا ہم فق ہی مکاتب فکر‪361...........................................................‬‬
‫فق ہاء ک ے اختلفات کی بنیادی وج ہ‪362...........................................‬‬
‫فق ہاء ک ے نقط ہ ہائ ے نظر میں ترجیح ک ے اصول‪363............................‬‬

‫موجودہ دور کے جنگی قیدیوں کے ساتھ کیا معاملہ کیا جائے؟‪364......‬‬
‫مجوزین ک ے دلئل‪364...............................................................‬‬
‫موجود ہ دور ک ے جنگی قیدیوں کو غلم بنان ے کو حرام قرار دین ے ک ے دلئل‬
‫‪365‬‬
‫مجوزین ک ے بعض شب ہات اور ان کا جواب‪366..................................‬‬

‫کیا غیر مسلم غلموں کی آزادی بھی اسلم کے نزدیک نیکی ہے؟‪.....‬‬
‫‪369‬‬
‫مکاتبت واجب ہے یا مستحب؟‪370...........................................‬‬
‫دور صحاب ہ میں مکاتبت ک ے واجب یا مستحب ہون ے کا معامل ہ‪371............‬‬
‫مکاتبت کو مستحب قرار دین ے والوں کی توضیح کا جواب‪372...............‬‬

‫مکاتب غلم ہے یا آزاد؟‪373...................................................‬‬
‫کیا اسلم میں غلم کو مال رکھنے کا حق حاصل ہے؟‪376..............‬‬
‫دور رسالت و صحاب ہ میں غلم ک ے لئ ے مال کمان ے اور رک ھن ے ک ے حقوق‪....‬‬
‫‪376‬‬
‫غلم ک ے مال رک ھن ے ک ے حق پر چند شب ہات اور ان کا جواب‪378.............‬‬

‫کیا غلم کو بھی اسلم نے وراثت کا حق دیا ہے؟‪380.....................‬‬
‫کیا اسلم نے غلم کو گواہی دینے کا حق دیا ہے؟‪382.....................‬‬
‫کیا اسلم نے عرب اور عجم کے غلموں میں فرق کیا ہے؟‪383........‬‬
‫کیا اسلم غلم کو شادی کرنے کا حق دیتا ہے؟‪384.......................‬‬
‫کیا اسلم موجودہ یا سابقہ غلم کو آزاد خاتون سے شادی کی اجازت‬
‫دیتا ہے؟‪386.......................................................................‬‬
‫کیا لونڈی کی اجازت کے بغیر عزل جائز ہے؟‪387.........................‬‬
‫کیا اسلم میں غلم کا فرار ہونا حرام ہے؟‪388............................‬‬
‫کیا غلم کو قتل کرنے کی سزا بھی قتل ہے؟‪391.........................‬‬
‫قصاص ک ے قائلین ک ے دلئل‪391...................................................‬‬
‫دوسر ے گرو ہ کی رائ ے‪392..........................................................‬‬

‫"اما مناء او اما فداء" کی تفسیر کیا ہے؟‪393.............................‬‬
‫جدید ا ہل علم کا نقط ہ نظر‪393....................................................‬‬
‫روایتی نقط ہ نظر‪393...............................................................‬‬
‫جنیوا کنونشن ک ے بعد جنگی قیدیوں کا حکم‪395..............................‬‬

‫کیا غلم کے بچے بھی غلم ہی ہوں گے؟‪396...............................‬‬
‫حرف آخر‪398....................................................................‬‬
‫‪12‬‬

‫حرف آخر‪398....................................................................‬‬

‫کتابیات ))‪401.............................Bibliography‬‬
‫مذہبی مآخذ‪401.................................................................‬‬
‫حدیث‪402.........................................................................‬‬
‫شروح حدیث اور دیگر متعلقہ علوم‪404....................................‬‬
‫سیرت‪405........................................................................‬‬
‫فن رجال‪406.....................................................................‬‬
‫تاریخ )مسلم مورخین(‪406....................................................‬‬
‫سیرت و تاریخ اسلم )غیر مسلم مورخین(‪407..........................‬‬
‫فقہ‪408............................................................................‬‬
‫قدیم مسلم مفکرین و مصلحین‪409........................................‬‬
‫جدید مسلم مفکرین و مصلحین‪410........................................‬‬
‫متفرق وسائل‪411..............................................................‬‬

‫‪13‬‬

‫دیباچ ہ‬
‫انسان نے انسان پر جو ظلم کیے ہیں‪ ،‬ان میں سب سے بڑا ظلم غلمسسی ہے۔ نسسسل‬
‫انسانیت پر اتنے ظلم کسی اور مخلوق نے نہ کیے ہوں گ سے جتن سے خسسود انسسسانوں ن سے‬
‫دوسرے انسانوں پر کیے ہیں۔ دور قدیم ہی سے انسان کو غلم بنانے کا رواج رہا ہے۔‬
‫ایک گروہ جب طاقت اور توانائی کے نئے ذخائر دریافت کر بیٹھتا تو وہ اپن سے ب ھائیوں‬
‫ہی کے دوسرے گروہوں پر حملہ کر کے انہیں غلم بنا لیتا۔ جہاں طاقت کسسام ن سہ آتسسی‪،‬‬
‫وہاں مختلف ہتھکنڈوں سے اپنے ہی بھائیوں کو ذہنی اور نفسیاتی غلم بنا لیا جاتا۔‬
‫جس دور میں دنیا میں غلمی کا سماجی ادارہ اپنے عروج پر رہا ہے‪ ،‬اسسسی دور‬
‫میں دنیا میں اللہ تعالی نے اپنے رسولوں کو دنیا میں بھیجا ہے۔ یہ ممکن ہی نہیں ت ھا‬
‫کہ اللہ کے رسول اس دنیا میں آئیں اور اس خلف انسانیت ادارے سے چشم پوشسسی‬
‫برتیں۔ موجودہ دور میں دین اسلم پر جسسو اعتراضسسات کئے گئے ہیسسں ان میسسں میسسرے‬
‫نزدیک سب سے بڑا اعتراض یہ ہے کہ اسلم نے غلمی کے ادارے کو قبولیت کی سند‬
‫عطا کی ہے۔‬
‫ظاہر ہے کہ اگر یہ الزام درست ہو تو خود اسلم کے بارے میں یہ شبہ پیدا ہو جاتسسا‬
‫ہے کہ یہ واقعتا ً خدا ہی کا دین ہے بھی یا نہیں کیونکہ خسسود قسسرآن میسسں اللسہ تعسسالی نسے‬
‫مساوات اور عدل کا درس دیا ہے۔ اگر اسلم غلمی کی حمایت کرتسسا ہے یسسا کسسم از‬
‫کم اسے قبول ہی کرتا ہے تو پھر معاذ اللہ خود اسلم میں تضاد پیدا ہو جاتسسا ہے ک سہ‬
‫ایک طرف انسانیت‪ ،‬مساوات اور عسسدل کسسا درس اور دوسسسری طسسرف غلمسسی کسسی‬
‫قبولیت؟ اس قسم کا تضاد کم از کم خدا کے دین میں نہیں ہو سکتا۔‬
‫اس سوال کا جواب حاصل کرنے کے لئے میں نے دور جدید کے بہت س سے مسسسلم‬
‫مفکرین کی کتب کا مطالعہ کیا۔ ان میں روایتی علماء سے لے کر جدیسسد طسسرز فکسسر‬
‫کے علماء اس سوال کا جواب دینے کی کوشش کرتے ہیں لیکن ان کے ہاں بہت سے‬
‫سوالت کو تشنہ چھوڑ دیا جاتسسا ہے۔ اس ضسسمن میسسں مستشسسرقین ک سے لسسٹریچر کسے‬
‫مطالعے کی بھی تفصیلی ضرورت محسوس ہوئی کیونکہ انہوں نے جس دقسست نظسر‬
‫سے اس موضوع کا جائزہ لیا ہے‪ ،‬اس کا عشسسر عشسسیر ب ھی مسسسلم علمسساء ک سے ہاں‬
‫موجود نہیں ہے۔ اس صورتحال نے مجھے مجبور کیا کہ میں چسسودہ صسسدیوں کسے پسسورے‬
‫لٹریچر کا تفصیلی مطالعہ کر کے حقیقت کسسو جسساننے کسسی کوشسسش کسسروں۔ یسہ کتسساب‬
‫اسی تحقیق کے نتائج پر مشتمل ہے۔‬
‫شروع میں میرا خیال تھا کہ اس مسسسئلے ک سے حسسل ک سے لئے غلمسسی س سے متعلسسق‬
‫قرآن مجید کی تمام آیات اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی تمام احسسادیث‬
‫کو اکٹھا کر لیا جائے تو یہ کافی رہے گا۔ جب میں نے مطالعہ شروع کیا تو معلوم ہوا‬
‫کہ اس مسئلے کہ بہت سسسی ج ہتیں )‪ (Dimensions‬ہیسسں۔ اس کسے نسستیجے میسسں مج ھے‬
‫قرآن و حدیث کے علوہ بہت سے دیگر علوم کی کتب کا مطالعہ کرنا پسسڑا جسسن میسسں‬
‫فقہ‪ ،‬اصول فقہ‪ ،‬علم رجال‪ ،‬تاریخ‪ ،‬قدیم و جدید مسسسلم مفکریسسن اور مصسسلحین کسسی‬
‫کتب اور مستشرقین کی کتب شامل ہیں۔‬
‫اس کتاب میں میں نے یہ بھرپور کوشش کی ہے کہ ہر قسسسم کسسی معلومسسات کسسا‬
‫تجزیہ بالکل غیر جانبداری سے کیا جائے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ ہمیں قرآن مجید میسسں‬
‫یہ حکم دیا گیا ہے کہ کسی بھی قوم کے بسسارے میسسں ب ھی ناانصسسافی سسے کسسام نسہ لیسسا‬
‫جائے۔ یہی وجہ ہے کہ بہت سے مقامات پر میں نے مسلمانوں کی تاریخ اور قوانین پر‬
‫‪14‬‬

‫بھی کڑی تنقید کی ہے اور جہاں جہاں غیر مسلم اقوام کے ہاں کسوئی مثبست اقسسدام‬
‫مل ہے تو اس کی تعریف بھی کی ہے۔ یہ کتاب کسی قوم‪ ،‬مذہب یسسا نقط سہ نظسسر ک سے‬
‫خلف نہیں ہے بلکہ اس کا مقصد معروضی طور )‪ (Objectively‬پر چنسسد سسسوالت کسسا‬
‫جواب حاصل کرنا ہے۔‬
‫یہ کتاب تحقیق کی تفصیلت کی بجائے اس کے نتائج پر مشتمل ہے۔ ہو سکتا ہے‬
‫کہ بعض لوگ یہ اعتراض کریں کہ یہ کتاب اسلم کے حق میں ایک متعصبانہ کتاب ہے۔‬
‫ان حضرات سے میری یہ گزارش ہے کہ وہ اس کتاب کے تمام مندرجات کو چھوڑ کر‬
‫قرآن‪ ،‬حدیث اور مسلم و غیر مسلم اہل علم کے جو اقتباسات میسسں ن سے پیسسش کئے‬
‫ہیں‪ ،‬صرف ان ہی کا مطالعہ کر لیں۔ اگر انہیسسں میسسرے کئے ہ ہوئے ترجمسے پسسر اعتمساد‬
‫نہیں ہے تو بصد شوق خود ترجمہ کر لیں یا کسی اور سے اس کا ترجم سہ کسسروا لیسسں۔‬
‫اس کے بعد اگر وہ میرے بیان کردہ نتائج سے کسی مختلف نتیجے پر پہنچتے ہیسسں تسسو‬
‫مجھے اپنے نتائج فکر لکھ بھیجیں تاکہ اس مسئلے پر مزید غور و فکر کیا جا سکے۔‬
‫اس کتاب کی تیاری کا سارا کریڈٹ میرے دوست محسن علی زین کو جاتسسا ہے‬
‫جنہوں نے اس کتاب کے لکھنے کی حقیقی تحریک میرے اندر پیدا کسسی۔ ان کسسے علوہ‬
‫میں اپنے دوست ریحان احمد یوسفی کا شکر گزار ہوں جن س سے اس موضسسوع ک سے‬
‫مختلف پہلوؤں پر میری بحسسث جسساری ر ہی۔ میسسں اپنسے اسسستاذ محمسسد عزیسسر شسسمس‬
‫صاحب کا بھرپور شکریہ ادا کرتا ہوں جن ہوں نسے اپنسا قیمستی وقسست نکسال کسر قسدیم‬
‫مسلم مصنفین کی کتب سے متعلق مجھے نہایت ہی مفیسسد معلومسسات فرا ہم کیسسں۔‬
‫اس کے ساتھ ساتھ میں ان تمام اداروں‪ ،‬محققین اور آئی ٹی ماہرین کا ب ھی شسسکر‬
‫گزار ہوں جنہوں نے چودہ صدیوں کے اسلمی لٹریچر کو سسسافٹ کسساپی کسسی صسسورت‬
‫میں انٹرنیٹ پر مہیا کر دیا ہے۔ اس کے نتیجے میں جس کسسام ک سے لئے کسسم از کسسم دو‬
‫سال درکار تھے‪ ،‬وہ محض دو ماہ میں ممکن ہو سکا ہے۔‬
‫کتاب کے آخر میں میں نے اسلم اور غلمی کے حوالے سے ایسسک ببلیسسو گرافسسی )‬
‫‪ (Bibliography‬تیار کرنے کی کوشش کی ہے جو اس موضوع پر مزید تحقیسسق کرن سے‬
‫والوں کے لئے ممد و معاون ثابت ہو گی۔‬
‫جو احباب اس کتاب کو پڑھیں‪ ،‬وہ بل تکلف اس سلسلے میں اپنسے تسساثرات‪ ،‬آراء‬
‫اور سوالت لکھ بھیجیں تاکہ ان کی روشنی میسسں اس کتسساب کسسو مزیسسد ب ہتر بنسسا دیسسا‬
‫جائے۔ اس کے بعد ارادہ ہے کہ انشاء اللہ اس کتاب کسسا انگریسسزی ترجم سہ کسسر ک سے غیسسر‬
‫مسلم محققین اور مستشرقین تسسک پہنچایسسا جسسائے تسساکہ ان کسے سسسامنے حقیقسست کسسو‬
‫آشکار کیا جا سکے۔ اللہ تعالی ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔‬
‫محمد مبشر نذیر‬
‫‪mubashirnazir100@gmail.com‬‬

‫‪15‬‬

‫حص ہ اول‪ :‬غلمی کا تعارف‬

‫‪16‬‬

‫باب ‪ :1‬غلمی کا تعارف‬
‫دور قدیم ہی سے دنیا میں انسان‪ ،‬اپنے جیسے دوسسسرے انسسسانوں کسسو اپنسسا غلم بنایسسا‬
‫کرتے تھے۔ غلمی کے آغاز کسے بسارے میسں کسسوئی حتمسی بسات کہنسا ممکسن نہیسں ہے۔‬
‫انسانیت کی معلوم تاریخ میں پائے جانے والے قسسدیم قسسوانین کسسا مجمسسوعہ‪ ،‬بابسسل کسے‬
‫بادشاہ حمورابی )‪ (BC 1750 – 1796‬کے قوانین کا ہے۔ یہ قوانین اب سسے کسسم و‬
‫بیش ‪ 3800‬سال پہلے بنائے گئے۔ ان قوانین کے مطالعے سے یہ بھی معلسسوم ہوتسسا ہے‬
‫کہ اس معاشسسرے میسسں عسسام لوگسسوں کسے علوہ اولد کسسو ب ھی اپنسے والسسدین کسسی غلم‬
‫سمجھا جاتا تھا اور اس کی خرید و فروخت کو بھی ایک نارمسسل بسسات سسسمجھا جاتسسا‬
‫تھا۔‬

‫غلمی کی تعریف‬
‫غلمی کی متعدد تعریفات کی گئی ہیں۔ جن میں سے چند یہ ہیں‪:‬‬
‫ایسسک شسسخص کسسو دوسسسرے کسسی ملکیسست میسسں مسسال و جائیسسداد کسسی طسسرح دے دیسسا جسسائے۔‬
‫)انسائیکلوپیڈیا بریٹانیکا(‬
‫ایک شخص کی دوسرے پر قبضے کی ایسی حالت کہ جس میں قابض کو وہ تمام اختیسسارات‬
‫حاصل ہو جائیں جو اسے اپنے مال و جائیداد پر حاصل ہوتے ہیں۔‬
‫)غلمی سے متعلق کنونشن ‪ ،1927‬سیکشن ‪( http://www.unhchr.ch ،1‬‬

‫مجموعی طور پر ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ غلمی ایسی حالت کسسا نسسام ہے جسسس میسسں‬
‫کوئی انسان دوسرے کے تابع ہو کر اس طرح سے زندگی بسر کرے کہ اس کے تمام‬
‫فیصلوں کا اختیار اس کے آقا کے پاس ہو۔‬

‫غلمی کا آغاز‬
‫جب سیدنا نوح علیہ الصلوۃ والسلم کی نسل دنیا کے مختلف علقسسوں میسسں جسسا کسسر‬
‫آباد ہوئی تو انہوں نے ہر جگہ مختلف معاشرے تشکیل دیے۔ غلمی کے آغاز سے پہلسسے‬
‫یقینی طور پر وہ فضا تیار ہوئی ہو گی جس میں غلمی کا ادارہ پروان چڑھا ہو گسسا۔‬
‫اس فضا میں طبقاتی نظام اور انسانی عدم مساوات کے نظریوں کا قبول کیا جانا‬
‫شامل ہے۔‬
‫غلمی کے آغاز سے متعلق دو نظریات پیش کئے گئے ہیں۔ ایک نظریہ تو یہ ہے کسسہ‬
‫غلمی کا آغاز للچ‪ ،‬نفرت‪ ،‬حقارت اور دوسروں پر غلبہ پسانے کسے جسذبات سسے ہوا۔‬
‫انہی بنیادوں پر قومیں ایک دوسرے پر حملہ کر کے ان کے افراد کو غلم بناتی رہیں۔‬
‫دوسرا نظریہ یہ پیش کیا جاتا ہے کہ اس کا آغاز رحم کے جذبے سے ہوا ت ھا۔ جسسب‬
‫جنگوں میں دشمن کے بہت سے سپاہی قیدی بنائے گئے تو یہ سوال پیدا ہوا کہ ان کسسا‬
‫کیا کیا جائے؟ ایک نقطہ نظر تو سامنے یہ آیا کہ انہیں ت ہہ تیسسغ کسسر دیسسا جسسائے۔ اس کسے‬
‫جواب میں دوسرا نقطہ نظر یہ پیش ہوا کہ انہیں قتل نسہ کیسسا جسسائے بلکسہ غلم بنسسا لیسسا‬
‫جائے۔ تیسری صورت انہیں آزاد کر دینے کی تھی لیکن اس میں سب سے بڑا مسئلہ‬
‫یہ تھا کہ وہ کہیں دوبارہ تیاری کر کے حملہ آور نہ ہو جسسائیں‪ ،‬اس وجسہ سسے غلمسسی کسسو‬
‫ترجیح دی گئی۔‬
‫‪17‬‬

‫ممکن ہے کہ دونوں نظریات ہی درست ہوں۔ کسی ایک قوم نے للچ‪ ،‬نفسسرت اور‬
‫غلبے کی بنیاد پر غلمی کا آغاز کیا ہو اور دوسری قوم نے رحم دلی ک سے جسسذبے ک سے‬
‫تحت غلمی کا آغاز کیا ہو۔ بہرحال یہ طے ہے کہ غلمی کو جب ایک مرتبہ قابل قبسسول‬
‫سمجھ لیا گیا تو اس کے بعد اس کی ایسی ایسی خوفناک شکلیں وجود میسسں آئیسسں‬
‫جن کے تذکرے سے انسانیت کی روح کانپ اٹھتی ہے۔‬

‫غلمی کی اقسام‬
‫غلمسی کسی بنیسسادی طسسور پسسر دو اقسسام ہیسسں‪ :‬ایسسک جسسسمانی و قسانونی غلمسی اور‬
‫دوسری ذہنی غلمی۔ جسسب ایسسک انسسسان مختلسسف ذرائع سسے دوسسسرے کسے جسسسم پسسر‬
‫کنٹرول حاصل کر کے اسے اپنا قیدی بنا لے تو یہ جسمانی غلمی کہلتی ہے۔ اس کی‬
‫مثال یہ ہے کہ کوئی کسی کو اغوا کر کے یا جنگ میں قید کسسر ک سے اپنسسا غلم بنسسا ل سے۔‬
‫اس کے برعکس جب کوئی شخص نفسیاتی ہتھکنڈے استعمال کرتے ہوئے اپنسسا ذہنسسی‬
‫غلم بنا لے تو اسے نفسیاتی غلمی کہا جاتا ہے۔‬
‫غلمی خواہ کسی بھی قسم کی ہو‪ ،‬غلمی ہی ہوتی ہے اور اس کے نسستیجے میسسں‬
‫ایک انسان دوسرے کا محتاج ہو جایا کرتا ہے۔ اس کتاب میں ہم ان دونوں قسم کی‬
‫غلمی پر بحث کریں گے۔‬
‫غلمی کے درجوں میں فرق ہوتا ہے۔ جسمانی غلمی بسا اوقات مکمسسل غلمسسی‬
‫ہوتی ہے جس میں ایک شخص دوسرے کا مکمل غلم ہوتا ہے۔ آقا کو اپنے غلم پر ہر‬
‫قسم کے حقوق حاصل ہوتے ہیں۔ وہ چاہے تو اپنے غلم کو قتل کر سکتا ہے‪ ،‬چاہے تسسو‬
‫اس کے جسم کا کوئی حصہ کاٹ سکتا ہے اور چاہے تو اس کا جنسی استحصال کسسر‬
‫سکتا ہے۔ بعض اوقات یہ غلمی صرف چند پہلوؤں س سے غلمسسی ہوتی ہے۔ اس کسسی‬
‫ایک شکل جاگیردارانہ دور کی مزارعت ہے جس میں جاگیردار کو اپنے مزارعوں پر‬
‫بہت سے حقوق حاصل ہوا کرتے ہیں۔‬
‫بالکل اسی طرح نفسیاتی غلمی کے ب ھی مختلسسف درجسے ہیسسں۔ کب ھی تسسو ایسسک‬
‫شخص دوسرے سے ایک حد تسسک ہی متسساثر ہوتسسا ہے اور بعسسض معسساملت میسسں اپنسے‬
‫نفسیاتی آقا کی پیروی کرتسا ہے اور کب ھی وہ اس کسا مکمسل غلم بسن کسر اس کسے‬
‫اشارہ ابرو پر اپنی جان بھی قربان کر دیا کرتا ہے۔‬

‫غلموں میں اضاف ے اور کمی کا‬
‫طریق کار‬
‫دنیا بھر کے مختلف معاشروں کی تاریخ کا اگر جائزہ لیا جائے تو غلم بنائے جانے کے‬
‫یہ طریقے معلوم ہوتے ہیں‪:‬‬
‫• بچوں کو اغوا کر کے غلم بنا لیا جائے۔‬
‫• اگر کسی کو کوئی لوارث بچہ یا لوارث شخص ملے تو وہ اسے غلم بنا لے۔‬
‫• کسی آبادی پر حملہ کر کے اس کے تمام شہریوں کو غلم بنا لیا جائے۔‬
‫• کسی شخص کو اس کے کسی جرم کی پاداش میں حکومت غلم بنا دے۔‬
‫• جنگ جیتنے کی صورت میں فاتحین جنگی قیدیوں کو غلم بنا دیں۔‬
‫‪18‬‬

‫• قرض کی ادائیگی نہ کر سکنے کی صسسورت میسسں مقسسروض کسسو غلم بنسسا دیسسا‬
‫جائے۔‬
‫• پہلے سے موجود غلموں کی اولد کو بھی غلم ہی قرار دے دیا جائے۔‬
‫• غربت کے باعث کوئی شخص خود کو یا اپنے بیوی بچوں کو فروخت کر دے۔‬
‫• پروپیگن سڈہ اور بریسسن واشسسنگ ک سے ہتھکن سڈے اسسستعمال کرت سے ہوئے کسسسی کسسو‬
‫نفسیاتی غلم بنا لیا جائے۔‬
‫• اگر کسی معاشرے میں ان طریقوں سے بنائے جانے والے غلموں کی تعسسداد‬
‫کم پڑ جاتی تو وہ معاشرہ کسی اور ملک سے غلم خرید کر اپنے غلموں میں‬
‫اضافہ کر سکتا تھا۔‬
‫کسی معاشرے میں غلموں کی تعداد میں کمی کی یہ صورتیں پائی جاتی تھیں۔‬
‫• غلم کو اس کا آقا اپنی مرضی سے آزاد کر دے۔‬
‫• حکومت کسی غلم کو آزاد قرار دے دے۔‬
‫• غلموں کو کسی دوسرے ملک میں لے جا کر بیچ دیا جائے۔‬
‫• غلموں کی آئندہ آنے والی نسل کو آزاد قرار دے دیا جائے۔‬
‫• نفسیاتی غلم کسی طریقے سے اپنے آقا کی ذہنی غلمی سے نکل آئے۔ اس‬
‫کی تفصیل ہم باب ‪ 20-19‬میں بیان کریں گے۔‬

‫غلمی کی بنیادی وجو ہات‬
‫اگر پوری انسانی تاریخ میں غلمی کا جائزہ لیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ غلمی کسسی‬
‫بنیادی طور پر تین وجوہات ہوا کرتی ہیں‪ :‬غربت‪ ،‬جنگ‪ ،‬اور جہالت۔‬
‫• غربت کو اگر غلمی کی ماں کہا جائے تو بے جا نہ ہو گسسا۔ غربسست کسے بسساعث‬
‫بہت سے انسانوں کو بنیادی ضروریات کے حصول کے لئے دوسروں کا محتسساج‬
‫ہونا پڑتا ہے۔ دنیا کے بہت سے معاشروں میں یہ رواج رہا ہے کہ امراء‪ ،‬غریبسسوں‬
‫کو ان کی بنیادی ضروریات کی فراہمی کے لئے سود پر قرض دیا کرت سے ت ھے‬
‫اور ان کی عدم ادائیگی کی صورت میں انہیں اپنا غلم بنا لیا کرتے تھے۔‬
‫• غلمی کی دوسری بڑی وجہ جنگ ہے۔ معلسسوم انسسسانی تاریسسخ میسسں طسساقتور‬
‫قومیں کمزور اقوام پر حملہ کر کے انہیں اپنا غلم بناتی رہی ہیں۔ بسا اوقات‬
‫یہ سلسلہ محض قوموں کی غلمی تک محدود رہا کرتسسا ت ھا اور بعسسض اوقسسات‬
‫مفتوح قوم کے ایک ایک فرد کو غلم بنا لیا جاتا تھا۔‬
‫• جسمانی غلمی کی تیسری وجہ جہالت ہے۔ یہ نفسیاتی غلمی کی سب سے‬
‫بڑی وجہ ہے۔ کم تعلیم یافتہ اور ناخواندہ افراد کو طالع آزما اور استحصال کے‬
‫شوقین افراد پروپیگنڈہ اور برین واشنگ کے ذریعے اپنسا نفسسیاتی غلم بنسا لیسا‬
‫کرتے تھے۔ بہت مرتبہ یہی نفسیاتی غلمی آگے چل کر جسسسمانی غلمسسی میسسں‬
‫تبدیل ہو جایا کرتی تھی۔‬

‫‪19‬‬

‫دور غلمی اور آسمانی مذا ہب‬
‫دور غلمی قدیم زمانے سے لے کر بیسویں صدی عیسوی تک چل ہے۔ اسی دور میں‬
‫اللہ تعالی نے اپنی ہدایت اپنے انبیاء و رسل کے ذریعے انسانیت کو دی ہے۔ یسسہ ہدایت‬
‫پہلے سیدنا ابراہیم‪ ،‬اسحاق اور اسماعیل علیہما الصلوۃ والسلم ک سے ذریع سے اخلقسسی‬
‫طور پر جاری کی گئی۔ جب سیدنا موسسسی علی سہ الصسسلوۃ والسسسلم ک سے زمسسانے میسسں‬
‫آسمانی ہدایت کو ایک اجتماعی نظسسام کسسی صسسورت میسسں رائج کیسسا گیسسا تسسو اس کسے‬
‫قوانین کو تورات کی صورت میسسں لکسھ کسسر دے دیسسا گیسسا۔ یسہ اجتمسساعی نظسسام سسسیدنا‬
‫موسی سے لے کر سیدنا داؤد و سلیمان علیہم الصلوۃ والسلم تک اپنی اصل شسسکل‬
‫میں رائج رہا۔‬
‫بعد کے ادوار میں ان انبیاء کے پیروکار اپنے اصل دین سے دور ہوتے چلے گئے اور‬
‫ان کا اجتماعی نظام اس صورت میں قائم نہ رہا جس صورت میسسں سسسیدنا موسسسی‬
‫علیہ الصلوۃ والسلم نے اسے رائج کیا تھا۔ ان کے دنیسسا پرسسست حکمرانسسوں اور شسسکم‬
‫پرست مذہبی راہنماؤں نے آسمانی ہدایت میں تحریف کا سلسلہ شروع کسسر دیسسا۔ ی سہ‬
‫درست ہے کہ اس قوم میں اچھے اور خوف خدا رکھنے والے لوگوں کی کمی نہ ت ھی‬
‫لیکن یہ حضرات تورات کے اصل نظام کو رائج کرنے کی پوزیشن میں نہ تھے۔‬
‫بنی اسرائیل کی سیاسی و مذہبی قیادت کے اس اخلقی انحطسساط کسسا نسستیجہ ی سہ‬
‫نکل کہ ان پسسر غلمسسی کسسا عسسذاب مسسسلط کیسسا گیسسا اور پہلسے ایسسران اور پ ھر روم کسسی‬
‫سلطنتوں نے انہیں کثیر تعداد میں غلم بنا کر دنیا بھر میں جل وطن کیا۔ اللہ تعسسالی‬
‫نے بنی اسرائیل کی طسسرف پ سے در پ سے نسسبی بھیج سے اور ان پسسر آخسسری حجسست سسسیدنا‬
‫عیسی علیہ الصلوۃ والسلم کے ذریعے تمام کر دی۔‬
‫دوسری طرف اولد ابراہیم کی دوسری شاخ بنی اسرائیل میسسں اللسہ تعسسالی نسے‬
‫اپنے آخری رسول محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو مبعوث فرمایسسا۔ آپ کسسو آخسسری‬
‫آسمانی ہدایت "قرآن" کی شکل میں دی گئی جس کی تعلیمات کسسی بنیسساد پسسر آپ‬
‫نے بالکل سیدنا موسی علیہ الصلوۃ والسلم کی طرز پر ایک اجتمسساعی نظسسام قسسائم‬
‫کر دیا۔ اس نظام کی تفصیلت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی احادیث کسسے‬
‫ذخیرے میں دیکھی جا سکتی ہیں۔ ی ہی وجسہ ہے کسہ بائبسسل میسں سسسیدنا موسسسی علیسہ‬
‫الصلوۃ والسلم سے یہ اللہ تعالی نے یہ وعدہ کیا ہے کہ "میں بنی اسرائیل کے ب ھائیوں‬
‫)یعنی میں بنی اسماعیل میں( تمہاری مانند ایک رسول برپا کروں گسسا اور اپنسسا کلم‬
‫اس کے منہ میں ڈالوں گا۔"‬
‫یہ نظام اپنی اصل شکل میں ساٹھ ستر سال تک قائم رہا۔ اس کے بعد اس میں‬
‫بھی خرابیاں پیدا کرنے کی کوشش کی گئی۔ ان کوششوں کی بدولت قرآن مجیسسد‬
‫کی ہدایت کو مسخ تو نہ کیا جا سکا لیکن عملی طور پر اس سے انحسسراف بہرحسسال‬
‫موجود رہا۔‬
‫آسمانی ہدایت خواہ وہ تورات و انجیل کسسی شسسکل میسسں ہو یسسا قسسرآن مجیسسد کسسی‬
‫شکل میں‪ ،‬اس میں "عدل" اور "مساوات انسانی" کو بنیادی اقدار قسسرار دیسسا گیسسا‬
‫ہے۔ اللہ تعالی کی دی گئی ہدایت اسسسی ک سے فرسسستادہ رسسسولوں ک سے ذریعسے ہہہم تسسک‬
‫پہنچسسی ہے۔ اس ہدایت کسسی بنیسساد پسسر معلسسوم تاریسسخ انسسسانی میسسں دو مرتبسہ خسسدائی‬
‫اجتماعی نظام بھی اپنی اصل شکل میں موجود رہا ہے۔‬
‫بچپن ہی سے میرے ذہن میں یہ سوال بار بار پیدا ہوتا تھا کہ ایسا ممکن ہی نہیسسں‬
‫ہے کہ اللہ تعالی ایک طرف تو "عدل" اور "مساوات" کسسی تلقیسسن کسسرے اور دوسسسری‬
‫طرف وہ انسانوں کو غلم بنائے رکھنسے کسسو ب ھی قبسسول کسسر لسے۔ ایسسسا تضسساد کسسسی‬
‫‪20‬‬

‫انسانی قانون میں تو ممکن ہے لیکن اللہ تعالی کی شریعت میں ایسسسا ہونسسا ممکسسن‬
‫نہیں ہے۔ اسی جذبے کے پیش نظر میں نے اللہ تعالی کی دی ہوئی ہدایت کسسا کھل سے‬
‫ذہن سے تفصیلی مطالعہ کیسسا۔ اس مطسسالعے ک سے جسسو نتسسائج نکل سے وہ اس کتسساب کسسی‬
‫صورت میں پیش کر رہا ہوں۔‬

‫غلمی پر ریسرچ کا طریق کار اور‬
‫اس ک ے بنیادی اصول‬
‫اس موضوع پر مسلمانوں کے اہل علم کے ہاں بہت ہی کم مواد موجود ہے۔ زیادہ تسسر‬
‫غیر مسلم اسکالرز نے اس ضمن میں کوششیں کی ہیں۔ میں نے ان کی کاوشسسوں‬
‫کا تفصیلی مطالعہ بھی کیا ہے۔ میرے نزدیک ان اسکالرز کی تحقیق میں ایک بنیادی‬
‫غلطی موجود ہے اور وہ یہ ہے کہ جسسب وہ "اسسسلم اور غلمسسی" ک سے موضسسوع پسسر بسسات‬
‫کرتے ہیں تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے لے کر آج تک کے مسلمانوں کا‬
‫عمل ان کے نزدیک "اسلم" ہوتا ہے۔ اس طریق کار کسسی بسسدولت مسسسلمانوں کسسا ہر‬
‫عمل خواہ وہ اسلم کی تعلیمات کے بالکل خلف ہی کیوں نہ ہو‪" ،‬اسلم" قرار پسساتی‬
‫ہے۔‬
‫یہ طریق کار بالکل غلط ہے۔ یہ بالکل اسی طرح ہے کہ کوئی یورپ یا امریکا ک سے‬
‫حکمرانوں کی غلطیوں کو لے اور اس کی بنیاد پر عیسائیت پر الزامات عائد کرن سے‬
‫لگے یا روس کے لینن یا اسٹالن کے مظالم کو لے کر اس کی بنیاد پر کارل مسسارکس‬
‫کو مطعون کرنے لگے۔ ظاہر ہے یہ طریق غیر علمی ہے۔ کسی بھی مذہب یا فلسسسفے‬
‫میں کسی خامی کی نشاندہی کا درست طریقہ یہ ہے کہ اس مسسذہب یسسا فلسسسفے ک سے‬
‫اصل مآخذ کو بنیاد بنایا جائے۔ اس کے علوہ اس مذہب کے بسسانی اور ان ک سے قریسسبی‬
‫اور مخلص پیروکاروں کے عمل کو دیکھا جائے۔ اس عمل کو دیکھنے کے لئے مسسستند‬
‫تاریخ کا ہونا بہت ضروری ہے۔ اگر کسی مذہب کی مستند تاریخ موجود نہ ہو تو اس‬
‫کے بارے میں اچھی یا بری کوئی رائے قائم کر لینا ایک غیر علمی رویہ ہے۔‬
‫آسمانی ہدایت کے بارے میں اگر کوئی رائے قائم کرنا مقصود ہو تو اس کسسے لئے‬
‫یہ ماخذ دیکھنا ہوں گے۔‬
‫• تورات‪ ،‬زبور یا انجیل جو اب بائبل مقدس کی صورت میں موجود ہے۔ اس‬
‫بات کا خیال رکھنا چاہیے کہ تاریخی طور پر یہ بات ثابت شدہ ہے کہ اس کتسساب‬
‫میں مذہبی راہنماؤں نے تصرفات اور تبدیلیاں کی ہیں۔ اس وجہ سے ان کتسسب‬
‫کے مواد کی بنیاد پر کوئی حتمی رائے قائم کرنا مشکل ہے۔‬
‫• قرآن مجید کے بارے میں تاریخی طور پر یہ تو متعین ہے کہ یہ صد فیصد وہی‬
‫کتاب ہے جو محمد رسول اللہ صلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے اپنسسی قسسوم کسے‬
‫سامنے کلم الہی کی حیثیت سسے پیسش کسی ت ھی۔ اس کتساب کسے متسن میسں‬
‫کوئی اختلف موجود نہیں ہے البتہ اس کی متعدد تشسسریحات )‪(Interpretations‬‬
‫کی گئی ہیں جن میں کسسسی حسسد تسسک اختلف پایسا جاتسا ہے۔ ان میسسں درسسست‬
‫تشریح کا انتخاب بہت ضروری ہے۔‬
‫•احادیث و آثار‪ ،‬محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور آپ کے صسسحابہ‬
‫کا تاریخی ریکارڈ ہے۔ اگرچہ بعسسد ک سے ادوار میسسں اس ذخیسسرے میسسں ب ہت سسسی‬
‫جعلی احادیث کی ملوٹ بھی کی گئی ہے۔ محدثین کی عظیسسم کاوشسسوں کسے‬
‫نتیجے میں ایسے طریق کار وجود میں آ گئے ہیں جسن کسسی بسسدولت اصسسلی اور‬
‫‪21‬‬

‫جعلی احادیث میں فرق کیا جا سکتا ہے۔ صرف اور صرف صحیح حدیث کسسی‬
‫بنیاد پر ہی کوئی حتمی رائے قائم کی جا سکتی ہے۔‬
‫• صحیح طریق کار یہ ہے کہ وہ بائبل کو قرآن مجید کی روشنی میں سسسمجھنے‬
‫کی کوشش کریں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ قرآن مجیسسد اللسہ تعسسالی کسسی دی گئی‬
‫ہدایت کا آخری ورژن ہے اور اس کا متن ہر قسم کی تحریفات سے پاک ہہہہے۔‬
‫اگرچہ اس طریقے پر وہی لوگ عمل درآمد کر سکتے ہیں جو قرآن مجیسسد کسسو‬
‫اللہ تعالی کی آسمانی ہدایت کا آخری ورژن مانتے ہیں۔‬
‫• احادیث کے بارے میں بھی محدثین کا یہ مسلمہ اصول ہے کہ کسی حدیث کسسو‬
‫صرف اسی صورت میں قبول کیا جا سکتا ہے جب وہ قسسرآن مجیسسد اور دیگسسر‬
‫صحیح احادیث کے مخالف مفہوم پیش نہ کر رہی ہو۔ )دیکھیے خطیب بغسسدادی‬
‫کی الکفایہ فی علم الروایۃ اور جلل الدین سیوطی کی تدریب الراوی(‬
‫• اسلم اور غلمی کے موضوع پر تحقیق کرتسے ہوئے کچسھ ایسسے مزیسسد ذرائع‬
‫ہیں جن سے استفادہ کرنا ضروری ہے کیونکہ اس ضمن میں اہم ترین مواد ان‬
‫کتب میں موجود ہے۔ اس ضمن میں راہنما اصول یہ ہیں‪:‬‬
‫• تاریخ کی کتب کا مطالعہ کرتے ہوئے ی سہ حقیقسست پیسسش نظسسر رہنسسی چسساہیے کسہ‬
‫مسلمانوں کے ہاں تاریخ کو کافی مسخ کر کے پیش کیا گیا ہے۔ اس کسسی وجسہ‬
‫بنیادی طور پر یہ تھی کہ شروع کی صدیوں میسں مسسلمانوں کسے انسدر ایسسے‬
‫فرقے پیدا ہوئے ہیں جنہوں نے اپن سے نظریسے کسسو تقسسویت دینسے کسے لئے تسساریخی‬
‫روایات کو گھڑ کر دنیا کے سامنے پیش کیا۔ بعد کے ادوار میں جسسب مسسورخین‬
‫نے ان روایات کو اکٹھا کیا تو انہوں نے سسسچی ج ھوٹی ہر قسسسم کسسی تسساریخی‬
‫روایات کو اپنی کتب میں لکھ دیا۔ انہوں نے ایسسا کرتسے ہوئے ہر روایست کسی‬
‫سند بھی بیان کر دی تاکہ بعد کا کوئی بھی محقق ان روایات کی چ ھان بیسسن‬
‫کرنا چاہے تو کر لے۔ اصلی اور جعلسی تسساریخی روایسات میسسں فسسرق کرنسا ب ہت‬
‫ضروری ہے۔‬
‫• فن رجال کی کتب کا مطالعہ اسسسلم اور غلمسی کسی بحسسث میسں ن ہایت ہی‬
‫مفید ہے۔ ایسے افراد جنہوں نسے رسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسی‬
‫احادیث اور آپ کے صحابہ کی روایات کو اگلی نسلوں تک منتقسسل کرنسے میسں‬
‫اپنا کردار ادا کیا‪ ،‬ان کے حالت زندگی فن رجال کی کتب میں ملتے ہیسسں۔ ان‬
‫میں سے ب ہت بسسڑی تعسسداد غلمسسوں اور آزاد کسسردہ غلمسسوں کسی ت ھی۔ ان کسے‬
‫حالت زندگی کے مطالعے سے صحابہ و تابعین کے ہاں غلمسسی کسسی صسسورتحال‬
‫پر نہایت ہی مفید معلومات میسر آتی ہیں۔‬
‫• بعد کی صدیوں میں غلمی کی صورتحال جاننے کے لئے مسسسلم علمسساء کسسی‬
‫کتب کا مطالعہ بہت ضروری ہے۔ ان میں فتاوی کی کتسسب میسسں مختلسسف ادوار‬
‫میں غلموں کی فقہی و قانونی حیثیت کا علم ہوتسسا ہے۔ حسسسبہ یعنسسی محکمسہ‬
‫احتساب سسے متعلسسق علمسساء کسسی کتسسب میسسں غلمسسوں سسے متعلسسق حکومسستی‬
‫اصلحات کی تفصیل ملتی ہے۔ مسلمانوں ک سے سسسماجی مصسسلحین کسسی کتسسب‬
‫سے ان کے دور میں غلموں کی سماجی حالت کا علم ہوتا ہے۔‬
‫• اسلم اور غلمی کے حوالے سے غیر مسلم مصنفین بالخصوص مستشرقین‬
‫نے بہت کچھ لکھا ہے۔ متعصب مصنفین کو چھوڑ کر ان میں سے بہت سے غیر‬
‫متعصب اسکالرز نے اس موضوع پر قابل قدر کام کیسسا ہے۔ ان حضسسرات کسسی‬
‫کتب میں اس موضسسوع کسے ایسسے ایسسے پہلسسوؤں پسسر بحسسث کسسی گئی ہے جسسو‬
‫‪22‬‬

‫موجودہ دور کے مسلم علماء کے وہم و گمان میسں ب ھی موجسسود نسہ ت ھے۔ اس‬
‫موضوع پر تحقیسسق کسے لئے ان غیسسر متعصسسب مغربسسی اسسسکالرز کسسی کتسسب کسسا‬
‫مطالعہ بہت ضروری ہے۔‬
‫میں نے کوشش کی ہے کہ اس کتاب کی تیاری میں ج ہاں تسسک ممکسسن ہو‪ ،‬ان تمسسام‬
‫وسائل سے استفادہ کیا جائے۔ آپ سے گسسذارش ہے ک سہ اس کتسساب کسسا مطسسالعہ کرتسے‬
‫وقت کھلے ذہن سسے اللسہ تعسسالی کسسی آسسسمانی ہدایت کسسا مطسسالعہ کیجیسے اور میسسرے‬
‫استدلل میں کہیں کوئی کوتاہی رہ گئی ہو تو اس سے مطلع فرما کر ممنون کریں۔‬

‫کتاب کی ترتیب‬
‫اس کتاب کو بنیادی طور پر چھ حصوں میں تقسسسیم کیسسا ہے۔ پہل حصسہ صسسرف ایسسک‬
‫باب پر مشتمل ہے جو اس موضوع اور کتاب کے تعارف سے متعلق ہے۔‬
‫دوسرے حصے میں اسلم سے پہلے دنیا میں غلمی کی حالت پر بحسسث کسسی گئی‬
‫ہے۔ یہ حصہ پانچ ابواب پر مشتمل ہے۔ اس میں ایران‪ ،‬یونان‪ ،‬قدیم مصر‪ ،‬ہندوستان‪،‬‬
‫چین‪ ،‬قدیم اسرائیل‪ ،‬روم اور عرب میں غلمی کسسا جسسائزہ پیسسش کیسسا گیسسا ہے۔ قسسدیم‬
‫اسرائیل میں غلمی کا مطالعہ اس وجہ سے نہایت اہمیت کا حامل ہے ک سہ اس میسسں‬
‫غلمی سے متعلق تورات کی اصلحات زیر بحث آئی ہیں۔ سلطنت روم کسسا مطسسالعہ‬
‫اس وجہ سے زیادہ اہم ہے کہ اس میں غلمی کے ادارے پر عیسسسائیت کسے اثسسرات زیسسر‬
‫بحث آئے ہیں۔ عرب میں غلمی کا مطالعہ اس وجہ سے نہایت ہے اہم ہے ک سہ اس ک سے‬
‫مطالعے سے ہی ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ اسلم کسسی اصسسلحات س سے پہل سے عسسرب میسسں‬
‫غلمی کی کیا صورت رائج تھی۔‬
‫تیسرا حصہ سات ابواب پر مشتمل ہے جس میں غلمی سے متعلق اسسسلم کسسی‬
‫اصلحات کا تفصیلی جائزہ لیسسا گیسسا ہے۔ ان اصسلحات میسسں غلمسسوں کسسی آزادی کسسی‬
‫تحریک‪ ،‬پہلے سے موجودہ غلموں سے متعلق اصسلحات اور نئے غلم بنسائے جسانے پسر‬
‫پابندیوں کی تفصیل بیان کی گئی ہے۔ اس ضمن میں دو مبسساحث چسسونکہ ن ہایت ہی‬
‫حساس تھے‪ ،‬اس وجہ سے ان پر علیحدہ باب قائم کئے گئے ہیسسں۔ ان میسسں س سے ایسسک‬
‫لونڈیوں سے متعلق اسلم کی اصلحات سے متعلسق ہے اور دوسسرا جنگسی قیسدیوں‬
‫سے متعلق۔ اس حصے میں غلمی کے ادارے پر اسلم کے اثرات کا جائزہ لیا گیا ہے۔‬
‫ایک باب اسلم اور نفسیاتی آزادی سے متعلق قائم کیا گیا ہے۔‬
‫کتاب کا چوتھا حصہ تین ابسواب پسر مشستمل ہے۔ اس حصسے میسں اس دور میسں‬
‫مسلم ممالک میں جسمانی و نفسیاتی غلمی کا جسسائزہ لیسسا گیسسا ہے جسسب مسسسلمان‬
‫بالعموم اپنے دین کی تعلیمات سے دور ہو چکے تھے۔ اس کے ساتھ ساتھ مسسسلم دنیسا‬
‫کی ہم عصر مغربی تہذیب میں غلمی کا جائزہ لیا گیا ہے تاکہ ان عوامل کی تفصیل‬
‫سامنے آ سکے جن کے نتیجے میں مغربی دنیسسا میسں غلمسی کسے خلف تحریسسک پیسسدا‬
‫ہوئی۔ اس کے آخر میں مسلم اور یورپی تہذیب میں غلمی کا تقابلی جائزہ لیسسا گیسسا‬
‫ہے۔‬
‫پانچواں حصہ غلمی اور موجسسودہ دور سسے متعلسسق ہے۔ یسہ حصسہ چسسار ابسسواب پسسر‬
‫مشتمل ہے۔ اس حصے میں غلمی کے خاتمے کی عالمی تحریک کا تجزیہ کیا گیا ہے۔‬
‫موجودہ دور میں غلمی کی صورتوں کا تجزیسہ کرتسے ہوئے اس کسے خسساتمے کسسا حسسل‬
‫پیش کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ اس حصے کے آخری دو ابواب نہایت ہی اہمیسست‬
‫کے حامل ہیں کیونکہ ان میں موجودہ دور میں موجود نفسسسیاتی غلمسسی اور اس کسے‬
‫علج پر بحث کی گئی ہے۔‬
‫‪23‬‬

‫کتاب کا چھٹا اور آخری حصہ اسلم اور غلمی سے متعلق جدیسد ذ ہن میسں پیسدا‬
‫ہونے والے سوالت سے متعلق ہے۔ اس حصے میں دو ابواب ہیں۔ پہل باب‪ ،‬اسلم اور‬
‫غلمی کے تعلق کے حوالے سے فلسفیانہ اور تاریخی نوعیت کے سوالت پر مشسستمل‬
‫ہے۔ دوسرے باب میں فقہی اور قانونی معاملت زیر بحث آئے ہیں جسسن میسسں ہ ہم نسے‬
‫اپنے علم کی حد تک ان سوالت کا جواب دینے کی کوشش کی ہے۔‬

‫‪24‬‬

‫حص ہ دوم‪ :‬زمان ہ قبل از‬
‫اسلم میں غلمی کی‬
‫تاریخ‬

‫‪25‬‬

‫باب ‪ :2‬ایران‪ ،‬یونان‪ ،‬چین‪،‬‬
‫مصر اور ہندوستان میں‬
‫غلمی‬
‫دور قدیم ہی سے غلمی کم و بیسسش تمسسام معاشسسروں میسسں موجسسود ر ہی ہے۔ کچ سھ‬
‫معاشروں میں غلموں سے متعلق قوانین اور ان کی حسسالت دیگسسر معاشسسروں س سے‬
‫بہتر رہی ہے‪ ،‬لیکسسن اس حقیقسست سسے انکسسار ممکسسن نہیسسں ہے کسہ غلمسی بہرحسسال ہر‬
‫معاشرتی نظام کا ایک اہم ادارہ رہی ہے۔ قسسدیم مصسسر‪ ،‬چیسسن‪ ،‬ہندوسسستان‪ ،‬ایسسران اور‬
‫بحیرہ روم کے ممالک میں غلموں کے موجود ہونے کا سراغ ملتا ہے۔‬
‫دور غلمی کی کچھ تفصیلت ہم دل پر پتھر رکھ کر یہاں بیسسان کسسر ر ہے ہیسسں۔ ی سہ‬
‫تفصیلت انسان پر انسان کے ظلم کی ایسسسی بھیانسسک تصسسویر پیسسش کرتسسی ہیسسں ک سہ‬
‫کلیجہ شق ہو کر رہ جاتا ہے۔ یہ تفصیلت صسسرف اور صسسرف دسسستیاب معلومسسات کسسی‬
‫بنیاد پر ہیں۔ ممکن ہے کہ حقیقت ان سے مختلف ہو۔ اگر تاریخ کے کوئی محقسسق ان‬
‫تفصیلت کو غلط ثابت کر سکیں تو سب سے زیادہ خوشی ہمیسسں ہو گسسی۔ مختلسسف‬
‫تاریخی شخصیتوں کے زمانے کے اندازے بھی‪ ،‬جو دستیاب ہیں پیش کر دیے گئے ہیں۔‬
‫اگر یہ بالکل درست نہ بھی ہوں‪ ،‬تب بھی ان سے کم از کم اس شخصیت کے زمسسانے‬
‫کا اندازہ ہو جاتا ہے۔‬
‫ہم یہ بات واضح کرنا ضروری سمجھتے ہیں کہ ان تفصیلت ک سے بیسسان کسسا مقصسسد‬
‫کسی قوم یا مذہب کی مذمت یا دل آزاری نہیں ہے۔ ان تفصسسیلت کسسو محسسض ایسسک‬
‫علمی تحقیق کے طور پر پیش کیا جا رہا ہے۔ اگر کسسسی قسسوم یسسا مسسذہب س سے تعلسسق‬
‫رکھنے والے کوئی صاحب انہیں دلئل کی بنیاد پر غلط قرار دے سکیں تو ہمیسسں حسسق‬
‫بات کو قبول کرنے میں کوئی جھجک محسوس نہ ہو گی۔‬

‫ایران بشمول عراق‬
‫بابل کے بادشاہ حمورابی )‪ (BC 1750 – 1796‬کے قوانین پتھر کی تختیوں پر لکھے‬
‫ہوئے ملے ہیں۔ آثار قدیمہ اور قدیم زبانوں کے ماہر ایل ڈبلیو کنسسگ نسے ان قسسوانین کسسا‬
‫ترجمہ کیا ہے جو کہ انٹرنیٹ پر پر دستیاب ہے۔ ان ک سے لنسسک ‪ http://www.wsu.edu‬اور‬
‫‪ http://eawc.evansville.edu‬ہیں۔‬
‫ان قوانین کے مطالعے سے ہم یہ نتائج اخذ کر سکتے ہیں‪:‬‬
‫• بابل کے معاشرے میں غلموں کی حیثیت بھی وہی تھی جو بسے جسان مسال و‬
‫اسباب اور جائیداد کی ہوا کرتی ہے۔ )قانون نمبر ‪(116 ,20-15 ,7‬‬
‫• زیادہ تر قوانین کا تعلسسق غلمسسوں کسے مسسالکوں کسے حقسسوق سسے متعلسسق ہے۔‬
‫غلموں کے حقوق سے متعلق کچھ زیادہ تفصیلت ہمیں ان قسسوانین میسسں نہیسسں‬
‫ملتیں۔ )قانون نمبر ‪( 280-278 ,116 ,20-15 ,7‬‬

‫‪26‬‬

‫• اولد کی حیثیت بھی والدین کے غلم ہی کی ہوا کرتی تھی اور والدین کو یہ‬
‫حق حاصل تھا کہ وہ اپنی اولد کو کسی ک سے ہاتھ فروخسست کسسر دیسسں۔ )قسسانون‬
‫نمبر ‪(7‬‬
‫• غلموں سے جبری مشقت لی جاتی تھی۔ )قانون نمبر ‪(118‬‬
‫• لونڈیوں سے ازدواجی تعلقات رکھے جاتے تھے۔ اگر لونڈی ک سے مالسسک کسسا اس‬
‫لونڈی سے بچہ پیدا ہو جاتا تو وہ لونڈی ناقابل فروخت تصور کسسی جسساتی ت ھی۔‬
‫اس لونڈی کو کچھ حالت میں آزادی بھی عطا کر دی جاتی تھی۔ اس لونسسڈی‬
‫کا درجہ کسی حد تک بیوی کے برابر ہو جاتا تھا لیکن مالک اگر چاہتا تسسو اس سے‬
‫نوکرانی بنا کر رکھ سکتا تھا۔ آقا کے مرنے کے بعد وہ لونڈی اور اس ک سے بچ سے‬
‫آزاد ہو جایا کرتے تھے۔ )قانون نمبر ‪(171 ,146 ,119‬‬
‫• بابل کے تمام عوام کو بادشاہ کا غلم سمجھا جاتا ت ھا اور بادشسساہ کسسو انہیسسں‬
‫سزا دینے یا جرائم کے باوجود معاف کر دینے کا حق حاصل تھا۔ )قانون نمسسبر‬
‫‪(129‬‬
‫• بہت سے غلم براہ راست ریاست کی ملکیسست ب ھی ہوا کرتسے ت ھے۔ )قسسانون‬
‫نمبر ‪(175‬‬
‫• اگر کوئی غلم کسی آزاد شخص کی بیٹی سے شسسادی کسسر لیتسسا تسسو اس ک سے‬
‫بچوں کو آزاد قرار دیا جاتا تھا۔ )قانون نمبر ‪(175‬‬
‫• غلم کی آنکھ نکال دینے یا اس کی ہڈی کو تسوڑ دینسے پسر اس کسے مالسک کسسو‬
‫غلم کی نصف قیمت ادا کرنا ضروری ت ھا۔ قسسانون میسسں یسہ وضسساحت موجسسود‬
‫نہیں ہے کہ جان بوجھ کر ایسا کرنے والے کے لئے قصاص کی سزا مقرر تھی یا‬
‫نہیں۔ )قانون نمبر ‪(199‬‬
‫• اگر غلم کسی آزاد شخص کو مار بیٹھتا تو اس کی پاداش میں اس کا کان‬
‫کاٹ دیا جائے۔ )قانون نمبر ‪(205‬‬
‫• طبی معالج کے لئے آزاد شخص ک سے علج کسسا معاوض سہ پانسسچ شسسیکل )ان کسسی‬
‫کرنسی( اور غلم کے علج کو معاوضہ دو شیکل تھا۔ )قانون نمبر ‪(223‬‬
‫• اگر میڈیکل آپریشن کے دوران غلم مر جاتا تو معالج کے لئے ضروری تھا کسسہ‬
‫وہ اس کے بدلے دوسرا غلم مالک کو دے۔ )قانون نمبر ‪(219‬‬
‫• غلموں کو ممیز کرنسے کسے لئے ان کسے جسسسم پسسر جراحسسی کسے ذریعسے کچسھ‬
‫علمتیں کھود دی جاتی تھیں۔ یہ کام ان کے حجسسام سسسر انجسسام دیسسا کرت سے جسسو‬
‫جراحت کے ماہر ہوتے۔ ان علمتوں کو کاٹنے یا توڑنے والے شخص کی سزا یسسہ‬
‫مقرر کی گئی کہ اس کے ہاتھ کاٹ دیے جائیں۔ )قانون نمبر ‪(226‬‬
‫• کسی دوسرے شخص کے غلم کو قتل کرنے کی سزا اس کسے سسسوا کچسھ نسہ‬
‫تھی کہ وہ اس کے بدلے میں مالک کو دوسرا غلم دے دے۔ )قانون نمبر ‪(231‬‬
‫• اگر غلم یہ دعوی کرتا کہ فلں اس کا مالک نہیں ہے اور دعوی غلط ثابت ہو‬
‫جاتا تو غلم کا کان کاٹ دیا جاتا۔ )قانون نمبر ‪(282‬‬

‫غلمی س ے متعلق سائرس اعظم کی اصلحات‬
‫بعد کسے ادوار میسسں ایسسران میسسں سسسائرس اعظسسم )‪ (530BC – 590‬کسسا دور ایرانسسی‬
‫سلطنت کا روشن ترین دور سمجھا جاتا ہے۔ بنی اسرائیل کی تاریخ سے معلوم ہوتا‬
‫‪27‬‬

‫ہے کہ سائرس نے غلمی کے خاتمے کے لئے بہت س سے اقسسدامات کئے۔ انہہہوں ن سے کسسثیر‬
‫تعداد میں اسرائیلی غلموں کو آزاد کیا اور انہیں اپنے وطن واپس جا کر آبسساد ہونے‬
‫کی اجازت دی۔ مسلم محققین کا خیال ہے کہ یہ سائرس ہی ہیں جن کا تذکرہ قرآن‬
‫مجید میں "ذوالقرنین" کے لقب آیا ہے۔‬

‫قدیم یونان‬
‫قدیم یونانی معاشرے کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ انہوں نے اپنے ہاں جمہوری نظام قائم‬
‫کیا تھا۔ اس جمہوری معاشرے میں بھی غلمی نہ صرف موجسسود ت ھی بلکسہ اس کسسی‬
‫جڑیں معاشرتی نظام میں بہت گہری تھیں۔ اس کی تفصیلت بیان کرتے ہوئے ہنسسدو‬
‫مورخ کے ایس لل لکھتے ہیں‪:‬‬
‫قدیم یونانی معاشرہ تین طبقات میں منقسم تھا۔ )سب سے اوپر( یونان کے وہ ش سہری ت ھے‬
‫جو آزاد پیدا ہوئے تھے۔ انہیں تمام حقوق حاصل تھے اور یہ لوگ سیاست میں ب ھی حص سہ لیسسا‬
‫کرتے تھے۔ دوسرا طبقہ پیریاسی )‪ (perioeci‬تھا جو کہ غیسسر ملکیسسوں پسسر مشسستمل ت ھا۔ انہیسسں‬
‫سیاسی حقوق حاصل نہ تھے البتہ ان کی حالت غلموں سے بہتر ت ھی کیسونکہ یسہ لسوگ بعسض‬
‫اوقات معاشی اور فوجی معاملت چلیا کرتے تھے۔‬
‫تیسرا طبقہ ہیلوٹس کا تھا جو غلموں پر مشتمل تھا۔ یونان میں بہت سے لوگوں کے پسساس‬
‫اپنی زمین نہ تھی اور )مزارعت پر کاشت کرنے کی وجہ سے( انہیں اپنی فصل کسسا بسسڑا حصسہ‬
‫جاگیر داروں کو دینا ہوتا تھا۔ اس وجہ سے یہ لوگ قرض لینے پر مجبور ہوتے اور سوائے اپنسے‬
‫جسم و جان کے ان کے پاس کوئی چیز رہن رکھنے کے لئے نہ ہوا کرتی ت ھی۔ ان لوگسسوں کسسو‬
‫غلم بنا لیا جاتا۔ کہا جاتا ہے کہ ایک وقسست میسسں ایتھنسسز شسہر میسسں محسسض ‪ 2100‬شسہری اور‬
‫‪ 460,000‬غلم موجود تھے۔‬
‫ہر آقا کے پاس کثیر تعداد میسسں مسسرد و عسسورت غلم ہہہوا کرتسے تھہہے۔ مسسرد غلم کسسانوں اور‬
‫کھیتوں میں کام کرتے جبکہ خواتین گ ھروں میسں کسام کرتیسں۔ غلمسوں کسو اپنسے آقساؤں کسو‬
‫خوش کرنے کے لئے سب کچھ کرنا پڑتا تھا۔ پہلسے عسبرانیوں کسے ہاں اور پ ھر یونسانیوں میسں‬
‫غلموں سے نہایت ہی سخت برتاؤ رک ھا جاتسسا ت ھا۔ یونسسان کسسی تمسسام شسہری ریاسسستوں میسسں‬
‫معاملہ ایک جیسا نہ تھا۔ ایتھنز میں غلموں سے کچھ نرمی برتی جاتی جبکہ سسسپارٹا میسسں ان‬
‫سے نہایت سخت سلوک کیا جاتا لیکن عمومی طور پر غلم بالکل ہی بے آسرا تھے۔‬
‫ڈریکو کے آئین )‪ (BC 621‬اور سولون کے قوانین سے غلموں کی حالت کچھ ب ہتر ہوئی۔‬
‫انہیں )افراد کی بجائے( ریاست کی ملکیت قرار دیا گیا اور کچھ بنیسسادی حقسسوق ب ھی فرا ہم‬
‫کیے گئے۔ سوائے ریاست کے اب انہیں کوئی اور موت کی سزا نسہ دے سسسکتا ت ھا۔ بہرحسسال یسہ‬
‫غلم ہی تھے جنہوں نے )اپنی محنت و مشقت کسے بسساعث( یونسسانیوں کسسو سیاسسست کرنسے اور‬
‫سیاسی فلسفے ایجاد کرنے کا وقت فرا ہم کیسسا جسسس کسسی بسسدولت یونسسانی پسسوری دنیسسا میسسں‬
‫مشہور ہوئے۔ )‪(Muslim Slave System, Chapter I‬‬

‫یونانی قوانین میں غلموں کے مختلف طبقات مقرر کیے گئے تھے۔ ان میں سسسے ہر‬
‫طبقے کے حقوق و فرائض ایک دوسرے سے مختلف تھے۔ وکی پیڈیا کے مقالہ نگاروں‬
‫نے اپنی تحریر "قدیم یونان میں غلمی )‪ "(Slavery in Ancient Greek‬میں ان کسسی‬
‫کچھ تفصیل بیان کی ہے۔‬
‫• ایتھنز کے غلموں کو اپنے مالک کی جائیداد سمجھا جاتا تھا۔‬
‫• غلم کو شادی کرنسے کسسی اجسسازت ت ھی لیکسسن قسسانون کسسی نظسسر میسسں "غلم‬
‫خاندان" کی کوئی حیثیت نہ تھی۔ مالک جب چاہتا وہ غلم کے بیوی بچسسوں کسسو‬
‫اس سے الگ کر سکتا تھا۔‬
‫• غلموں کے قانونی حقوق عام شہریوں کی نسبت بہت کم ت ھے اور غلمسسوں‬
‫کو عدالتی معاملت اپنے آقاؤں کے توسط سے ہی کرنا پڑتے تھے۔‬

‫‪28‬‬

‫• قانونی تفتیش کے علوہ غلموں پر بالعموم تشدد نہ کیا جاتا تھا۔ اگسسر کسسوئی‬
‫شخص دوسرے کے غلم پر تشدد کرتا تو اس کا آقا جرمانہ وصول کسسر سسسکتا‬
‫تھا۔ اگر کوئی شخص اپنے غلم پر ظلم کرتا تسسو کسسوئی ب ھی آزاد ش سہری اس‬
‫معاملے کو عدالت تک لے جا سکتا تھا۔ سقراط کے بقول‪ ،‬ادنی ترین غلم کسو‬
‫بھی سوائے قانونی تفتیش کے موت کی سزا نہ دی جا سکتی تھی۔‬
‫• ڈریکو کا آئین‪ ،‬جو کہ ایتھنز کا پہل تحریری آئین مانا جاتسسا ہہہے‪ ،‬میسسں غلم ک سے‬
‫قتل کی سزا بھی موت ہی مقرر کی گئی۔ اس کی وجہ یہ بیسسان کسسی گئی ک سہ‬
‫اگر غلموں کو بکثرت قتل کر دیا گیا تو یہ معاشرے کے لئے نقصان دہ ہو گا کہ‬
‫لوگ ایک دوسرے کے غلموں کسسو مسارنے لگیسسں گسے۔ بہرحسسال اس آئیسسن کسسو یسہ‬
‫کریڈٹ دینا پڑے گا کہ اس نے بہرحال غلم اور جانور میں فرق کیا ہے۔‬
‫• ایتھنز میں غلموں سے بہتر سسسلوک کیسسا جاتسسا۔ نئے غلم کسسا اسسستقبال پھلسسوں‬
‫وغیرہ سے کیا جاتا۔ غلموں کو اپنے آقاؤں کے دیوتاؤں کی عبادت کی اجسسازت‬
‫بھی ہوتی۔‬
‫• ایتھنز میں غلموں کو الگ سے مال رکھنے کی اجازت نہ تھی لیکن وہ مالسسک‬
‫سے آزادی خریدنے کے لئے مال جمع کر سکتے تھے۔‬
‫• ایتھنز میں غلموں کو اپنے مالکوں کی طرح کسی آزاد لڑکے سے ہم جنسسس‬
‫پرستانہ تعلقات رکھنے کی اجازت نہ تھی۔ ایسا کرنے کسسی صسسورت میسسں انہیسسں‬
‫پچاس کوڑے کی سزا دی جاتی۔‬
‫• مالکوں کو اس کی اجازت تھی کہ وہ اپنسے غلمسسوں سسے ہم جنسسس پرسسستانہ‬
‫تعلقات قائم کر سکیں۔‬
‫• غلموں کو آزاد کرنے کی روایت موجود تھی۔ آزادی کے بعد کسی کو دوبارہ‬
‫غلم نہ بنایا جا سکتا تھا۔ بعض غلموں کو اس بات کی اجسسازت ب ھی دی گئی‬
‫کہ وہ اپنے مالک کو ایک طے شدہ معاوضسہ ادا کرنسے کسے سسساتھ سسساتھ اپنسسا السسگ‬
‫کاروبار کر سکیں۔‬

‫چین اور کنفیوشن ممالک‬
‫چین میں بھی دور قدیم میں غلمی موجود رہی ہے۔ چونکہ تاریخ کے تمام ادوار میں‬
‫چین ایک زیادہ آبادی وال خطہ رہا ہے اس وجہ سے ی ہاں غلمسسی اور نیسسم غلمسسی کسسی‬
‫مختلف صورتیں موجود رہی ہیں۔ انسائیکلو پیڈیا بریٹانیکا کے مقالہ نگسسار ک سے الفسساظ‬
‫میں‪:‬‬
‫چین میں غلمی شانگ خانسدان )اٹ ھارہویں سسے بسارہویں صسدی قبسل مسسیح( کسے دور سسے‬
‫موجود رہی ہے۔ تفصیلی تحقیق کے مطابق ہان خاندان )‪ (206BC – 220CE‬کے دور میں چین‬
‫کی کم و بیش پانچ فیصد آبادی غلموں پر مشتمل تھی۔ غلمی بیسویں صدی عیسوی تسسک‬
‫چینی معاشرے کا حصہ رہی ہے۔ زیادہ تر عرصے میں یہ ظاہر ہوتا ہے کسہ ی ہاں ب ھی غلم ان ہی‬
‫طریقوں سے بنائے جاتے تھے جن طریقوں سے دنیا کے دوسرے حصوں میں غلم بنائے جسساتے‬
‫تھے۔ ان میں جنگی قیدی‪ ،‬آبادی پر حملہ کر کے انہیں غلم بنانا اور مقروض لوگوں کو غلم‬
‫بنانا شامل ہے۔ اس کے علوہ چین میں قرضوں کی ادائیگی یا خوراک کی کمسسی ک سے بسساعث‬
‫اپنے آپ کو اور اپنی عورتوں اور بچوں کو بیچ ڈالنے کا رواج بھی رہا ہے۔ جرائم میسں ملسوث‬
‫مجرموں کے قریبی رشتہ داروں کو بھی غلم بنا لیا جاتا۔ بعض ادوار میں اغوا کسسر کسے غلم‬
‫بنانے کا سلسلہ بھی رائج رہا ہے۔‬
‫‪http://www.britannica.com/eb/article-24156/slavery‬‬

‫‪29‬‬

‫چین روم کی طرح مکمل طور پر ایک غلم معاشرہ نہیں بسسن سسسکا۔ اس کسسی سسسب‬
‫سے بڑی وجہ یہی ہے کہ یہاں ہمیشہ سے عام طور پر سستے کارکن موجود رہے ہیسسں۔‬
‫بعض غلموں سے اچھا سلوک بھی کیا جاتا رہا ہے لیکن اس ک سے بسساوجود انہیسسں ب ہت‬
‫سے انسانی حقوق حاصل نہ رہے ہیں۔‬
‫کنفیوشس )‪ (479BC – 551‬کے فلسفے اور اخلقیات پر یقین رکھنے والے دیگر‬
‫ممالک جیسے مشرقی چین‪ ،‬جاپسسان اور کوریسسا میسسں ب ھی غلمسسی موجسسود ر ہی ہے۔‬
‫اسمتھ کے مطابق ابتدائی طور صرف حکومت کسسو غلم بنسسانے کسسی اجسسازت دی گئی‬
‫جو کہ جنگی قیدیوں اور دیگر مجرموں کو غلم بنانے تک محدود تھی۔ کچ سھ عرص سے‬
‫بعد پرائیویٹ غلمی اور جاگیردارانہ مزدوری کا نظام بھی آہستہ آہستہ پیدا ہو گیا۔‬

‫قدیم مصر‬
‫مصر میں بھی دنیا کے دوسرے خطوں کی طسسرح غلمسسی موجسسود ر ہی ہے۔ مصسسری‬
‫قوانین کے تحت پوری رعایا کو فرعون کا نہ صسسرف غلم سسسمجھا جاتسسا ت ھا بلک سہ ان‬
‫سے فرعون کی عبادت کا مطالبہ کیا جاتا تھا۔ اہرام مصر کی تعمیر سے متعلق جسسو‬
‫تفصیلت ہمیں ملتی ہیں‪ ،‬ان کے مطابق ا ہرام کسی تعمیسر ہزاروں کسی تعسداد میسں‬
‫غلموں نے کی تھی۔ کئی کئی ٹن وزنی پتھر اٹھانے کے دوران بہت سے غلم حادثات‬
‫کا شکار بھی ہوئے تھے۔‬
‫مصر میں زیادہ تر غلم دریائے نیل کی وادی اور ڈیلٹا کسے علقسسوں میسسں موجسسود‬
‫تھے اور کھیتی باڑی کیا کرتے تھے۔ بہت سے غلم مندروں سے وابستہ ہوا کرتے ت ھے۔‬
‫غلموں کے ساتھ عام طور پر اچھا سلوک نہیں کیا جاتا تھا۔ ی ہاں سسسرکاری غلمسسوں‬
‫کا طبقہ بھی موجود تھا جو سرکاری ملزمتیں سرانجام دیا کرتا تھا۔ یسسہ غلم نسسسبتا ً‬
‫بہتر حالت میں موجود تھے۔‬
‫)دیکھیے ‪( http://nefertiti.iwebland.com/timelines/topics/slavery.htm‬‬
‫مصر میں چوری جیسے جرائم کی سزا کے طور پر غلم بنانے کے رواج کسسا ذکسسر‬
‫قرآن مجید کی سورہ یوسف میں ہوا ہے۔ یہاں یہ وضاحت موجود نہیسسں ہے کسہ ایسسے‬
‫شخص کو ساری عمر کے لئے غلم بنا دیا جاتا تھا یا پ ھر کچسھ مخصسوص مسدت کسے‬
‫لئے ایسا کیا جاتا تھا۔‬
‫مصر میں غربت کے باعث لوگوں میں خود کو فروخت کر دینے کا رجحان ب ھی‬
‫موجسسود ت ھا۔ مصسسر کسسی تاریسسخ میسسں سسسیدنا یوسسسف علی سہ الصسسلوۃ والسسسلم وہ پہل سے‬
‫ایڈمنسٹریٹر تھے جنہوں نے اس رواج کو ختم کرتے ہوئے کثیر تعداد میں غلمسسوں کسسو‬
‫آزادی عطا کی۔ حافظ ابن کثیر اہل کتاب کے علماء کے حوالے سے لکھتے ہیں‪:‬‬
‫وعند أهل الكتاب أن يوسف باع أهل مصر وغيرهم من الطعام الذي كان تحسست يسسده‬
‫بأموالهم كلها من الذهب والفضسسة والعقسسار والثسساث ومسسا يملكسسونه كلسسه‪ ،‬حسستى بسساعهم‬
‫بأنفسهم فصاروا أرقاء‪ .‬ثم أطلق لهم أرضهم‪ ،‬وأعتق رقابهم‪ ،‬على أن يعملوا ويكون‬
‫خمس ما يشتغلون من زرعهم وثمارهم للملك‪ ،‬فصارت سنة أهل مصر بعسسده‪) .‬ابسسن‬
‫کثير؛ قصص النبياء(‬
‫اہل کتاب کے علم کے مطابق سیدنا یوسف علیہ السلم نے ا ہل مصسسر اور دیگسسر لوگسسوں کسسو‬
‫سونا‪ ،‬چاندی‪ ،‬زمین اور دیگر اثاثوں کے بدلے کھانے پینے کی اشسسیاء فروخسست کیسسں۔ جسسب ان‬
‫کے پاس کچھ نہ رہا تو انہوں نے خود کو ہی بیسسچ دیسسا اور غلم بسسن گئے۔ اس کسے بعسسد آپ نسے‬
‫انہیں ان کی زمینیں واپس کر دیں اور ان تمام غلموں کو آزاد کر دیا اور شرط یہ رکھی کہ‬
‫وہ کام کریں گے اور فصلوں اور پھلوں کا پانچواں حصہ حکومت کو دیسسں گ سے۔ اس ک سے بعسسد‬
‫مصر میں یہی قانون جاری ہو گیا۔‬
‫‪30‬‬

‫یہی واقعہ بائبل کی کتاب پیدائش کے باب ‪ 47‬میں موجسسود ہے۔ سسسیدنا یوسسسف علیسہ‬
‫الصلوۃ والسلم کے دور اقتدار کے کافی عرصے بعد میں مصسسر ک سے قسسدیم باشسسندوں‬
‫میں قوم پرستی کی ایک عظیم تحریک پیدا ہوئی اور بنی اسسسرائیل ک سے سرپرسسست‬
‫ہکسوس بادشاہوں کو اقتدار سے بے دخل کر کے بنسسی اسسسرائیل کسسو غلم بنایسسا گیسسا۔‬
‫بنی اسرائیل کے لئے یہ ایک عظیم آزمائش تھی۔ سیدنا موسی علیہ الصلوۃ والسسسلم‬
‫کے دور میں انہیں آزادی نصیب ہوئی۔ بعسسد ک سے ادوار میسسں ب ھی مصسسر میسسں غلمسسی‬
‫موجود رہی ہے۔‬

‫ہندوستان‬
‫کے ایس لل کی فراہم کردہ تفصیلت کے مطابق قدیم ہندوستان میسسں ب ھی غلمسسی‬
‫موجود رہی ہے البتہ دنیا کے دیگر خطوں کی نسبت یہاں غلموں سے بہتر سلوک کیا‬
‫جاتا رہا ہے۔ گوتم بدھ نے اپنے پیروکاروں کو حکم دیا کہ وہ غلمسسوں س سے صسسرف اتنسسا‬
‫ہی کام لیں جو وہ کر سکیں۔‬
‫چندر گپت موریہ )‪ (300BC – 100BC‬کے دور میں غلموں س سے متعلسسق قسسوانین‬
‫بنائے گئے جن میں یہ شامل تھا کہ غلموں کو بغیر کسی معقول وجہ کے ان کا مالک‬
‫سزا نہیں دے سکتا۔ اگر وہ ایسا کرے گا تو حکومت اس آقا کو سزا دے سسسکتی ہے۔‬
‫اشوک اعظم نے غلموں سے نرم برتاؤ رکھنے کا حکم دیسسا۔ غلمسسوں س سے اتنسسا اچ ھا‬
‫سلوک کیا جاتا تھا کہ یونانی سیاح میگاستھینز )‪ (350BC – 290BC‬یہ سمجھ بیٹھا کہ‬
‫ہندوستان میں غلمی پائی ہی نہیں جاتی۔‬
‫موریہ دور میں لکھی گئی ارتھ شاستر میں آریہ غلموں کو بہت سے حقوق دیسسے‬
‫گئے ہیں۔ وکی پیڈیا کے مقالہ نگار کے مطابق مقروض شخص یا اس کے بیوی بچسسوں‬
‫کو صرف عدالتی حکم کے تحت ہی غلم بنایا جا سکتا ہے۔ غلم بنن سے ک سے بعسسد ب ھی‬
‫اسے جائیداد رکھنے‪ ،‬اپنی محنت کی اجرت وصول کرنے اور اپنی آزادی خریسسدنے کسسا‬
‫حق رہتا ہے۔ غلمی ایک محدود مدت کے لئے ہوتی ہے جس کے اختتام پسسر غلم خسسود‬
‫بخود آزاد ہو جاتا ہے۔‬
‫قدیم ہندوستان کی ایک خصوصیت یہ بھی رہی ہے کہ اس میسسں عسسام غلمسسی کسے‬
‫علوہ غلمی کی ایک بالکل ہی الگ تھلگ شکل بھی پائی جاتی ہے جسسس کسسی مثسسال‬
‫دنیا کے کسی اور خطے میں نہیں ملتی۔ یہ یہاں کا ذات پات کا نظام ہے۔ اس نظسسام‬
‫کے تحت معاشرے کو چار بنیادی ذاتوں میں تقسیم کیا گیا۔ ان میں برہمسسن کسسا کسسام‬
‫مذہبی رسومات سر انجام دینا‪ ،‬کھشتری کا کام فوج اور حکومتی معاملت دیکھنسا‪،‬‬
‫ویش کا کام تجارت کرنا اور شودر کا کام زراعت‪ ،‬صفائی اور دیگر نچلے درجے کے‬
‫کام کرنا ہے۔‬
‫ذات پات کے نظام کے بارے میں ہنسسدو ا ہل علسسم ک سے ہاں اختلف پایسسا جاتسسا ہے۔‬
‫ہندوستان کی قدیم کتب کے مطالعے سے یہ معلوم ہوتسسا ہہہے کسہ ابتسسدائی طسسور پسسر یسہ‬
‫تقسیم محض معاشی نوعیت کی تھی۔ ایسسک پیشسے سسے تعلسسق رکھنسے وال دوسسسرے‬
‫پیشے کو اختیار کر سکتا تھا۔ اس کی مثال ان آیات میں ملتی ہے‪:‬‬
‫‪A bard am I, my dad's a leech, mammy lays corn upon the stones. (Rig Veda,‬‬
‫)‪http://www.hinduwebsite.com‬‬
‫میں شاعر ہوں‪ ،‬میرے والد ایک طبیب تھے اور والدہ پتھروں پر مکئی پیسنے والی ہیں۔ )رگ‬
‫وید ‪(9.112.3‬‬
‫‪(Thus) a Sudra attains the rank of a Brahmana, and (in a similar manner) a Brahmana‬‬
‫‪31‬‬

‫‪sinks to the level of a Sudra; but know that it is the same with the offspring of a Kshatriya‬‬
‫)‪or of a Vaisya. (Manu Smriti, Sanskrit Text with English Translation, 10:65‬‬
‫ایک شودر کا بیٹا برہمن بن سکتا ہے اور برہمسسن کسا بیٹسا شسودر بسن سسکتا ہے۔ ی ہی معساملہ‬
‫کھشتری اور ویش کا بھی ہے۔‬

‫بعد کے ادوار میں یہ نظام سختی اختیار کرتا چل گیا اور میرٹ کی جگ سہ وراثسست ن سے‬
‫لے لی۔ مغربی محقق کلرنس اسمتھ کے الفاظ میں‪":‬‬
‫غلمی کی جڑوں کو قدیم ہندو کتب میں تلش کیا جا سکتا ہے۔ آواگون کے عقیدے کے تحت‬
‫)کسی شخص کے( غلم ہونے کو اس کے پچھلے جنم کے گناہوں کی سزا قسسرار دیسسا گیسسا۔۔۔۔۔‬
‫غلمی اور ذات پات کے نظام اگرچہ بعض مشترک پہلو بھی رکھتے تھے لیکسسن انہیسسں یکسسساں‬
‫قرار نہیں دیا جا سکتا۔ برہمنوں نے خود کو غلم بنسسائے جسسانے سسے مسسستثنی قسسرار دینسے کسسی‬
‫کوشش کی۔ انہوں نے یہ کوشش کی کہ غلم صرف اور صرف نچلے درجے کسسی ذاتسسوں سسے‬
‫بنائے جائیں لیکن عملی طور پر غلم کسی بھی ذات کے ہو سکتے تھے۔‬
‫)‪(Relgions & Abolition of Slavery – a comparative approach, p.2‬‬

‫آہستہ آہستہ اس نظام نے وہ شکل اختیار کر لسی جسس میسں شسودر کسو چ ھونے سسے‬
‫برہمن ناپاک ہو جاتا تھا۔ شودروں کا کام محض بڑی ذاتوں کی خدمت ہی رہ گیا۔ یسہ‬
‫سمجھا جانے لگا کہ بڑی ذاتوں کے افراد اپنی پیدائش سے ہی پاک اور چھوٹی ذاتوں‬
‫کے لوگ ناپاک ہوتے ہیں۔ اس نظام کی مزید تفصیلت سسسدھیر برودکسسار کسے آرٹیکسسل‬
‫"جاتی ورنا میٹرکس" میں دیکھی جا سکتی ہے۔ یہ آرٹیکل اس لنک پر دستیاب ہے۔‬
‫‪http://www.hindubooks.org/sudheer_birodkar/hindu_history/castejati-varna.html‬‬
‫انڈین معاشرے کو یہ کریڈٹ جاتا ہے کہ روم‪ ،‬یونسسان اور مصسسر ک سے برعکسسس ی ہاں‬
‫اس قسم کی غلمی کے خلف بھی بہت سسسی اصسسلحی تحریکسسوں نسے جنسسم لیسسا۔ ان‬
‫میں گوتم بدھ کی تحریک سب سے قدیم سمجھی جاتی ہے۔ اس کے علوہ جین مت‬
‫اور بعد کے ادوار میں بھگتی اور سکھ تحریکیں قابل ذکر ہیں۔ دور جدید میں دلتوں‬
‫کو بھارتی آئین میں بہت سے حقوق حاصل ہو چکے ہیں اور ذات پات کے قدیم نظام‬
‫کے خلف ایک مضبوط تحریک سیکولر انڈیا میں پائی جاتی ہے۔‬

‫غلمی اور بد ھ حکومتیں‬
‫گوتم بدھ )‪ (543BC – 623‬نے غلموں سے اچھا سلوک کرنے کا حکم دیا ہے۔ انہوں‬
‫نے غلموں کی تجارت سے نفع کمانے سے منع فرمایا۔ گوتم بسسدھ بسسذات خسسود اگرچ سہ‬
‫بہار کی ریاست کے ایک شہزادے تھے لیکن ان ہوں نسے خسود حکسومت نسہ کسی۔ ان کسے‬
‫پیروکاروں میں سے اشوک اعظم )‪ (232BC – 269‬نے بدھ تعلیمسسات کسسی بنیسساد پسسر‬
‫حکومت قائم کی۔ اشوک نے غلمی کا مکمسسل خسساتمہ کیسے بغیسسر مہاتمسسا بسسدھ کسسی ان‬
‫تعلیمات پر عمل کرنے کا حکم قانونی طور پر جاری کیا۔‬
‫بعد کے ادوار میں سری لنکسسا اور جنسسوب مشسسرقی ایشسسیا کسے ممالسسک میسسں بسسدھ‬
‫سلطنتیں قائم ہوئیں۔ ان میں اگرچہ غلمی کو تو بڑی حد تک کم کر دیسسا گیسسا لیکسسن‬
‫غلموں کی جگہ مزارعت کے نظام )‪ (Serfdom‬نے لے لسسی جسسو غلمسسی ہی کسسی ایسسک‬
‫نسبتا ً بہتر شکل تھی۔ مغربی محقق ویلیم جی کلرنسسس اسسسمتھ اس کسسی تفصسسیلت‬
‫بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں‪:‬‬
‫قرون وسطی کے یورپ کی طسسرح‪ ،‬رحسسم دل بسسدھ کسے ی سہ خیسسالت غلمسسوں کسسو مزارعسسوں )‬
‫‪ (Serfdom‬میں تبدیل کر سکتے تھے۔ تیرہویں صدی تک سری لنکا اور جنوب مشرقی ایشسسیا‬
‫کے مین لینڈ )برما‪ ،‬تھائی لینڈ‪ ،‬ویسست نسسام وغیسسرہ( میسسں‪ ،‬تھیسسرو وادو )روایسستی بسسدھ فرقسہ( بسسدھ‬
‫سلطنتوں میں مزدوروں کی تعداد غلموں سے بڑھ چکی تھی۔ اکثر اوقات کی جسسانے والسسی‬
‫‪32‬‬

‫فوجی کاروائیوں کا مقصد لوگوں کو قید کر کے انہیں پوری پوری کمیونٹی کی صورت میں‬
‫زمین سے وابستہ کیا گیا جو بعض اوقات بدھ عبادت گاہوں کی جاگیر ہوا کرتی تھی۔ قسسرض‬
‫ادا نہ کر سکنے والے مقروض جو کہ کثیر تعداد میں تھے‪ ،‬جسسبری مزارعسسوں میسسں شسسامل کسسر‬
‫دیے گئے۔‬
‫)‪(Religions & Abolition of Slavery – a comparative approach, p.3‬‬

‫‪33‬‬

‫باب ‪ :3‬غلمی اور بنی‬
‫اسرائیل‬
‫قدیم اسرائیل میں بھی غلمی موجود رہی ہے۔ بنی اسسسرائیل حضسسرت ابراہیسسم علی سہ‬
‫الصلوۃ والسلم کے پوتے سیدنا یعقوب علیہ الصسسلوۃ والسسسلم کسسی اولد ت ھے۔ سسسیدنا‬
‫یوسف علیہ الصلوۃ والسلم نے انہیں مصر میں دریائے نیل کے ڈیلٹا کے زرخیز علقے‬
‫میں آباد کیا تھا۔ جیسا کہ ہم اوپر بیان کر چکے ہیں کہ آپ کے دور اقتسسدار ک سے کسسافی‬
‫عرصے بعد میں مصر کے قدیم باشندوں میں قوم پرستی کسسی ایسسک عظیسسم تحریسسک‬
‫پیدا ہوئی اور بنی اسرائیل کے سرپرست ہکسوس بادشاہوں کو اقتدار سے بے دخل‬
‫کر کے بنی اسرائیل کو غلم بنایا گیا۔‬
‫بائبل اور قرآن مجید میں بنی اسرائیل کی جو تاریخ ملتی ہے اس ک سے مطسسابق‬
‫اللہ تعالی نے سیدنا موسی علیہ الصلوۃ والسلم کو فرعون کی طرف مبعسسوث کیسسا۔‬
‫آپ نے اس کے سامنے جو مطالبات رکھے ان میں ایک خدا پر ایمان لن سے ک سے سسساتھ‬
‫ساتھ دوسرا مطالبہ یہ بھی تھا کہ وہ بنی اسرائیل کو غلمسی سسے آزاد کسسر کسے انہیسسں‬
‫آپ کے ساتھ روانہ کر دے۔ فرعون نے یہ مطالبات منظور نہ کیے۔ ایک طویل جدوج ہد‬
‫کے بعد فرعون اور اس کا لشکر بحیرہ قلزم میں غرق ہوا اور بنی اسرائیل کو اس‬
‫کی غلمی سے نجات مل سکی۔‬
‫بائبل اور قرآن میں بار بار اللہ تعالی بنی اسرائیل اپنا یہ احسان یاد دلتسا ہے کسہ‬
‫اس نے انہیں غلمی سے نجات عطا کی۔ اس وجہ سے ان پر لزم ہے کہ وہ اللہ تعالی‬
‫کی عبادت کریں اور دوسروں کے سسساتھ اچ ھا سسسلوک کرنسے والسے بنیسسں۔ بائبسسل کسے‬
‫مطالعے سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ اللہ تعالی غلمی سے نفرت کرتا ہے اور اس سے ایسسک‬
‫لعنت قرار دیتا ہے۔‬
‫آزادی کسے بعسد سسسیدنا موسسی علیسہ الصسسلوۃ والسسلم کسے زمسانے میسں ہی بنسسی‬
‫اسرائیل کو موجودہ اردن کے علقے میں اقتدار مل اور اس کے لئے تفصیلی قسسوانین‬
‫اللہ تعالی کی طسرف سسے ان کسے لئے نسازل کیسے گئے جسن کسا مجمسوعہ تسورات ہے۔‬
‫موجودہ بائبل بنی اسرائیل کی تاریخ کا مجموعہ ہے جس میں تسسورات کسسا متسسن ب ھی‬
‫شامل ہے۔‬
‫بائبل کی تاریخ کے مطابق اسرائیلی سلطنت کو ہم دو ادوار میسسں تقسسسیم کسسر‬
‫سکتے ہیں۔ ان کا ایک دور سیدنا موسی )‪ (1393BC – 1273BC‬سے شسسروع ہو کسسر‬
‫سیدنا سلیمان علیہما الصلوۃ والسلم )‪ (1025BC – 953BC‬پر ختم ہوتا ہے۔ اس دور‬
‫میں تورات کی حقیقی تعلیمات اسرائیلی سلطنت کسا قسانون تھیسں۔ بعسد کسے ادوار‬
‫میں ایک سیدنا عزیر و نحمیاہ علیہما الصلوۃ والسلم کے دور )‪ (458BC – 397BC‬کو‬
‫چھوڑ کر بالعموم ان کے حکمرانوں میں دین سے انحراف کا رویہ عام ر ہا حسستی ک سہ‬
‫حکمرانوں اور امراء کی خواہشات کے مطابق تورات کے قانون میں بھی تحریفسسات‬
‫کی جانے لگیں۔ غلمی سے متعلق تورات کے قوانین کا جسسائزہ لیت سے ہوئے ہمیسسں اس‬
‫فرق کو ملحوظ خاطر رکھنا چاہیے۔‬
‫بنی اسرائیل کے ہاں بھی غلمی کا ماخذ جنگسسی قیسسدی ہی ت ھے۔ اس کسے علوہ‬
‫جب وہ کوئی علقہ فتح کرتے تو وہاں پہلے سے موجود غلموں کا معسساملہ ب ھی پیسسش‬
‫‪34‬‬

‫آتا۔ اسرائیلیوں کے مفتوحہ علقوں میں قرض کی عدم ادائیگی یا جسسرائم کسسی سسسزا‬
‫کے طور پر غلم بنائے جانے کا سلسلہ بھی موجود تھا۔‬

‫غلمی س ے متعلق تورات کی‬
‫اصلحات‬
‫بنی اسرائیل کے آئیڈیل دور میں جس میں ان کی حکومت براہ راست اللہ تعالی کے‬
‫مبعوث کردہ انبیاء کرام کے ماتحت تھی‪ ،‬واضح طسسور پسسر ہمیسسں ی سہ ملتسسا ہے ک سہ بنسسی‬
‫اسرائیل کو انسانوں سے عمومی طور پر اور غلموں سے خصوصی طور پسسر اچ ھا‬
‫سلوک کرنا چاہیے۔ ان قوانین کی تفصیل یہ ہے‪:‬‬
‫• اچھے سلوک کا یہ دائرہ صرف اسرائیلیوں تک ہی محدود نہیں رہنا چاہیے بلکہ‬
‫غیر اقوام کے افراد جنہیں بائبل میں "پردیسی )‪ "(Gentiles‬کہا گیا ہے‪ ،‬ان ک سے‬
‫ساتھ بھی ویسا ہی سلوک کرنا ضروری ہے جیسا کہ اسرائیلیوں کے ساتھ کیسسا‬
‫جاتا ہے‪" :‬کوئی پردیسی )غیر قوم کا فرد( تمہارے ساتھ تمہارے ملک میں رہتسا ہو تسو اس‬
‫کے ساتھ بدسلوکی نہ کرنا۔ جو پردیسی تمہارے ساتھ رہتا ہو اس سسے دیسسسی )اسسسرائیلی(‬
‫جیسا برتاؤ کرنا بلکہ تم اس سے اپنے ہی ماننسسد محبسست کرنسسا کیسسونکہ تسسم ب ھی مصسسر میسسں‬
‫پردیسی تھے۔ میں خداوند تمہارا خدا ہوں۔" )احبار باب ‪(19‬‬

‫چ ھ برس بعد غلموں کی آزادی کا قانون‬
‫• چھ برس کی خدمت کے بعد غلم یا کنیز کو خود بخود آزاد کر دیے جسسانے کسسا‬
‫قانون بنا دیا گیا‪" :‬اگر تو عبرانی غلم خریدے تو وہ چھ برس تیسسری خسسدمت کسسرے لیکسسن‬
‫ساتویں برس وہ قیمت ادا کیے بغیر آزاد ہو کر چل جسسائے۔" )خسسروج بسساب ‪" (21‬اگسسر کسسوئی‬
‫عبرانی بھائی‪ ،‬خواہ مرد ہو یا عورت‪ ،‬تمہارے ہاتھ بیچا گیا ہو اور وہ چھ سال تمہاری خدمت‬
‫کر چکے تو ساتویں سال تم اسے آزاد کر کے جانے دینا۔" )استثنا باب ‪(15‬‬
‫• چھ برس بعد غلم کی آزادی کے وقت اس سے اعلی درجے کا حسن سلوک‬
‫کرنے کا حکم دیا گیا۔ "اور جب تم اسے آزاد کر دو تو اسے خالی ہاتھ رخصست نسہ کرنسا‬
‫بلکہ اپنے گلہ )مویشیوں(‪ ،‬کھلیان )زرعی پیداوار( اور کولہو )صنعتی پیداوار( میں سے اسے‬
‫دل کھول کر دینا۔ یاد رکھو ملک مصر میں تم بھی غلم ت ھے اور خداونسسد تم ہارے خسسدا ن سے‬
‫تمہیں اسے سے خلصی بخشی۔ اس لیے آج میں تمہیں یہ حکم دے رہا ہوں۔" )اسسستثنا بسساب‬
‫‪(15‬‬
‫• چھ برس بعد غلموں کی اس آزادی کو خوش دلی سے قبول کرنا ضسسروری‬
‫قرار دیا گیا‪" :‬اپنے خادم کو آزاد کرنا اپنے لیے تم بسسوجھ نسہ سسسمجھنا۔ کیسسونکہ اس نسے چسھ‬
‫سال تمہارے لیے دو مزدوروں کے برابر خدمت کی ہے اور خداوند تمہارا خدا تمہارے ہر کام‬
‫میں تمہارے لیے برکت دے گا۔" )استثنا باب ‪(15‬‬

‫غلم ک ے ازدواجی حقوق‬
‫• غلم کو شادی کا حق دیا گیا اور اس کے ساتھ اس کے بیوی بچوں کسسو ب ھی‬
‫آزاد کرنے کا حکم دیا گیا‪" :‬اگر وہ اکیل خریسسدا جسسائے تسسو اکیل ہی آزاد کیسسا جسسائے۔ اگسسر‬
‫شادی شدہ ہو تو اس کی بیوی کو بھی اس کے ساتھ ہی آزاد کیا جائے۔" )خروج باب ‪(21‬‬
‫• غلم کو اس فیصلے کا حق دیا گیا کہ اگر وہ اپنے آقا کی محبت یا اپنی مالی‬

‫تنگدستی کے باعث آزادی کی ضرورت محسوس نہ کرتا ہو تو بدستور غلمی‬
‫میں رہے۔ اس کی وجہ بنیادی طور پر یہ تھی کہ بہت سے غلم اتنسسی صسسلحیت‬
‫نہ رکھتے تھے کہ وہ آزاد ہو کر اپنا پیٹ پال سکیں۔ ان کسے مالسسک ان کسے پسسورے‬
‫خاندان کی کفالت کا بوجھ اٹھائے ہوئے تھے‪ ،‬جس کے ختسم ہوتے ہی غلم کسے‬
‫‪35‬‬

‫روزگار کے چھن جانے کا خدشہ تھا‪" :‬اگر وہ غلم یہ اعلن کرے ک سہ میسسں اپن سے آقسسا اور‬
‫اپنی بیوی بچوں سے محبت رکھتا ہوں اور میں آزاد ہو کر نہیں جانا چاہتسسا‪ ،‬تسسو اس کسسا آقسسا‬
‫اسے قاضیوں کے پاس لے جائے اور اسے دروازے یا اس کی چوکھٹ پسسر ل کسسر سسسوئے س سے‬
‫اس کا کان چھید دے۔ تب وہ عمر بھر اس کی خدمت کرتا رہے گسسا۔" )خسسروج بسساب ‪ 21‬اور‬
‫استثنا باب ‪(15‬‬

‫غلم پر تشدد کی حرمت کا قانون‬
‫• غلم پر تشدد کو حرام قرار دے دیا گیا۔ ایسا کرن سے وال سے کسسو حکسسومت کسسی‬
‫جانب سے سزا دی جائے۔ "اگر کوئی شخص اپنسے غلم یسسا کنیسسز کسسو لٹ ھی سسے ایسسسا‬
‫مارے کہ وہ فورا ً مر جائے تو اسے لزما ً سزا دی جائے۔" )خروج باب ‪(21‬‬
‫• غلم پر تشدد کے بدلے اسے آزاد کرنے کا حکم دیا گیا۔ "اگسسر کسسوئی آدمسسی اپن سے‬
‫غلم یا کنیز کی آنکھ پر ایسا مارے کہ وہ پھوٹ جائے تو وہ اس کی آنکھ کے بسسدلے اسسے آزاد‬
‫کر دے۔ اور اگر وہ کسی غلم یا کنیز کا دانت مار کر اسے توڑ ڈالے تو وہ اس کے دانت کے‬
‫بدلے اسے آزاد کر دے۔" )خروج باب ‪(21‬‬

‫آزاد شخص کو غلم بنان ے کی ممانعت‬
‫• آزاد شخص کو غلم بنانے کی سزا موت مقرر کسسی گئی۔ "جسسو کسسوئی دوسسسرے‬
‫شخص کو اغوا کرے‪ ،‬خواہ اسے بیچ دے‪ ،‬خواہ اسسے اپنسے پساس رک ھے اور پکسڑا جسائے تسو وہ‬
‫ضرور مار ڈال جائے۔" )خروج باب ‪(21‬‬
‫• اگر کوئی مفلسی کے ہاتھوں خود کو بیچنا چاہے تو اس کی ممانعت کسسر دی‬
‫گئی۔ "اگر تمہارے درمیان تمہارا ہم وطن مفلس ہو جائے اور اپنے آپ کو تم ہارے ہاتھ بیسسچ‬
‫دے تو اس سے غلم کی مانند کام نہ لینا۔ بلکہ اس سے ایک مزدور یا تمہارے درمیان کسی‬
‫مسافر کی طرح سلوک کیا جائے اور وہ )زیادہ سے زیادہ( جوبلی کے سال تسسک تم ہارے لیسے‬
‫کام کرے۔" )احبار باب ‪(25‬‬
‫• بنی اسسسرائیل کسسو خسساص طسسور پسسر غلم بنسسانے کسی ممسسانعت کسی گئی۔ "بنسسی‬
‫اسرائیل میرے خادم ہیں جنہیں میں مصر سے نکال کر لیا لہذا ان کو بطور غلم کے ہرگسسز‬
‫نہ بیچا جائے۔" )احبار باب ‪(25‬‬

‫مظلوم غلموں کی آزادی کا قانون‬
‫• مظلوم غلم اگر بنی اسرائیل کی پناہ میں آ جائے تو اسسے آزاد کسر دینسے کسا‬
‫حکم دیا گیا۔ "اگر کسی غلم نے تمہارے پاس پناہ لی ہو تو اسے اس کے آقا کے حوالے ن سہ‬
‫کر دینا۔ اسے اپنے درمیان جہاں وہ چاہے اور جس شہر کو وہ پسند کرے وہیں رہنے دینسسا۔ اور‬
‫تم اس پر ظلم نہ ڈھانا۔" )استثنا باب ‪(23‬‬

‫مقروض کو غلم بنا لین ے کی ممانعت‬
‫• سود کو قطعی حرام قرار دے دیا گیا۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ سودی قسسرض‪،‬‬
‫غلمی کا ایک اہم سبب تھے۔ "تم اپنے بھائی سے سود وصول نہ کرنسسا خسسواہ وہ روپسسوں‬
‫پر‪ ،‬اناج پر یا کسی ایسی چیز پر ہو جس پر سود لیا جاتا ہے۔" )استثنا باب ‪(23‬‬
‫• مقروض کی شخصی آزادی کو پوری طرح برقسسرار رکھن سے کسسی ہدایت کسسی‬
‫گئی۔ "جب تم اپنے ہمسائے کو کسی قسم کا قرض دو تسسو جسسو ش سے وہ ر ہن رکھنسسا چسساہے‬
‫اسے لینے کے لئے اس کے گھر میں داخسسل نسہ ہو جانسسا بلکسہ بسساہر ہی ک ھڑے رہنسسا ۔۔۔۔اگسسر وہ‬
‫شخص مسکین ہو تو اس کی رہن رکھی ہوئی چادر کو اوڑھ کر نہ سو جانا۔" )اسسستثنا بسساب‬
‫‪(23‬‬
‫• مقروض اگر سات سال تک اپنا قرض ادا نہ کر سکے تو اس کا قرض معاف‬
‫کر دینے کا حکم دیا گیا۔ "ہر سات سال کے بعد تم قرض معاف کر دیا کرنسسا۔" )اسسستثنا‬
‫باب ‪(15‬‬
‫‪36‬‬

‫• غریب مزدوروں کی مفلسی سے فائدہ اٹھانے کی ممانعت کر دی گئی۔ "تسسم‬
‫مزدور کی مفلسی اور محتاجی کا ناجائز فائدہ نہ اٹھانا خواہ وہ اسرائیلی بھائی ہو یا کسوئی‬
‫اجنبی ہو جو تمہارے کسی شہر میں رہتا ہو۔" )استثنا باب ‪(23‬‬

‫لون ڈیوں کی آزادی س ے متعلق خصوصی اصلحات‬
‫• اگر کوئی آقا اپنی کنیز کے طرز عمل سے خوش نسہ ہو تسسو وہ اسسے آزاد کسسر‬
‫دے۔ "اگر وہ )کنیز( آقا کو جس نے اسے اپنے لئے منتخب کیا تھا خسسوش ن سہ کسسرے تسسو وہ اس‬
‫کی قیمت واپس لے کر اسے اپنے گھر جانے دے۔ اسے اس کنیز کو کسسسی اجنسسبی قسسوم کسسو‬
‫بیچنے کا اختیار نہیں کیونکہ وہ اس کنیز کو لنے کے بعد اپنا کیا ہوا وعدہ پورا ن سہ کسسر سسسکا۔"‬
‫)خروج باب ‪(21‬‬
‫• بیٹوں کی کنیزوں سے بیٹیوں جیسا سلوک کیا جائے اور ان پر بسسری نظسسر ن سہ‬
‫رکھی جائے۔ "اگر وہ اسے )یعنی کنیز کو( اپنے بیٹے کے لئے خریدتا ہے تسسو اس ک سے سسساتھ‬
‫بیٹیوں وال سلوک کرے۔" )خروج باب ‪(21‬‬
‫• کنیز کو کسی صورت میں بھی بنیادی حقوق سے محروم نہ کیسسا جسسائے۔ اگسسر‬
‫ایسا نہ کیا گیا تو وہ خود بخود آزاد ہو جائے گی۔ "اگر وہ کسی دوسری عسسورت کسسو‬
‫بیاہ لئے تو لزم ہے کہ وہ اس کنیز یعنی پہلی عورت کو کھانے‪ ،‬کپڑوں اور ازدواجسسی حقسسوق‬
‫سے محروم نہ کرے۔ اگر وہ اسے یہ تین چیزیں مہیا نہیں کرتا تو وہ کنیز اپن سے آزاد ہونے کسسی‬
‫قیمت ادا کیے بغیر واپس جا سکتی ہے۔" )خروج باب ‪(21‬‬
‫• تورات کے قانون کے مطابق آزاد شخص کو بدکاری کے جرم میں موت کسسی‬

‫سزا مقرر کی گئی تھی۔ لیکن کنیزوں کے حالت کو پیش نظسسر رکھت سے ہوئے‬
‫ان کے لئے اس سزا میں تخفیف کر دی گئی۔ "اگر کوئی آدمی کسی ایسسسی کنیسسز‬

‫سے جنسی تعلقات پیدا کر لے جو کسی اور کی منگیتر ہو لیکن نہ تو اس کا فدیہ دیا گیا ہو‬
‫اور نہ ہی وہ آزاد کی گئی ہو تو کوئی مناسب سزا دینا ضروری ہے تاہم انہیں جسسان س سے ن سہ‬
‫مارا جائے کیونکہ وہ عورت آزاد نہیں کی گئی تھی۔" )احبار باب ‪(19‬‬
‫• ایسی لوارث خواتین جو جنگی قیدی کے طور پر اسرائیل میں لئی جائیں‪،‬‬

‫کے لئے یہ ضابطہ مقرر کیا گیا کہ ان سے شادی کر لی جائے جو کہ ظاہر ہے کسسہ‬
‫خاتون کی اجازت ہی سے ہو سکتی ہے۔ "جب تم اپنے دشمنوں سے جنگ کرنے نکلو‬

‫اور خداوند تمہارا خدا انہیں تمہارے ہاتھ میں کر دے اور تسسم انہیسسں اسسسیر کسسر ک سے لؤ اور ان‬
‫اسیروں میں سے کوئی حسین عورت دیکھ کر تم اس پر فریفتہ ہو جاؤ تو تم اس سے بیاہ‬
‫کر لینا۔۔۔۔جب وہ تمہارے گھر میں رہ کر ایک ماہ تک اپنے ماں باپ ک سے لئے مسساتم کسسر چک سے‬
‫تب تم اس کے پاس جانا اور تب تم اس کے خاوند ہو گے اور وہ تمہاری بیسسوی ہو گسسی۔ اور‬
‫اگر وہ تمہیں نہ بھائے تو جہاں وہ جانا چاہے‪ ،‬اسے جانے دینا۔ تم اس کا سودا نہ کرنسسا‪ ،‬نسہ اس‬
‫کے ساتھ لونڈی کا سا سلوک روا رکھنا کیونکہ تم نے اسے بے حرمت کیا ہے )یعنی اس سسے‬
‫ازدواجی تعلقات قائم کیے ہیں۔(" )استثنا باب ‪(21‬‬

‫ان آیات کا بغیر کسی تعصب کے مطالعہ کیا جائے تو واضح طور پر یہ معلوم ہوتا ہے‬
‫کہ سیدنا موسی علیہ الصلوۃ والسلم اور آپ کے خلفاء راشدین کے دور میں غلمسسی‬
‫کے خاتمے اور موجود غلموں کی صورتحال کو بہتر بنانے کے لئے حکومت کی سطح‬
‫پر اقدامات کئے گئے۔ غلموں پر تشدد کو ممنوع قرار دیسسا گیسسا اور ایسسسا کرنسے کسسی‬
‫صورت میں انہیں آزاد کر دینے کا حکم دیا گیا۔‬
‫غلم بنانے کا ایک اہم راستہ یہ تھا کہ غریب اور مقروض افراد‪ ،‬جو اپنا قسسرض ادا‬
‫کرنے کی طاقت نہ رکھتے ہوں‪ ،‬کو غلم بنا لیا جائے۔ تورات نے واضح طور پسسر سسسود‬
‫کی حرمت کا اعلن کیا اور تنگدست اور مقروض اگر خود ب ھی غلم بننسسا چساہے تسسو‬
‫ایسا کرنے کی ممانعت کر دی۔ غربست سسے لوگسوں کسو بچسانے کسے لئے مسزدور کسی‬
‫مزدوری فورا ً ادا کرنے کا حکم دیا گیا۔‬

‫‪37‬‬

‫جو غلم پہلے سے معاشرے میں موجود تھے‪ ،‬ان کے لئے یہ قسسانون بنسسا دیسسا گیسسا کسہ‬
‫انہیں چھ سال کی سروس کے بعد آزاد کر دیا جائے۔ یہ آزادی تنگ دلی کے ساتھ نہ ہو‬
‫بلکہ اس غلم کے ساتھ اس کے بیوی بچوں کو بھی نہ صرف آزاد کیسا جسائے بلکسہ آقسا‬
‫اپنے مال و اسباب میں سے بھی دل کھول کر انہیں نوازے۔ غلموں پسسر تشسسدد کرن سے‬
‫سے منع کر دیا گیا۔ ان خواتین کا خاص طور پر خیال رکھا گیا جو جنگی قیسسدی کسسے‬
‫طور پر بنی اسرائیل کے ہاں آ جائیں۔ ان کے ساتھ ساتھ کنیزوں کے حقسسوق کسسا ب ھی‬
‫پورا تحفظ کیا گیا۔‬

‫‪38‬‬

‫باب ‪ :4‬بنی اسرائیل ک ے‬
‫دور انحطاط میں غلمی‬
‫سیدنا سلیمان علیہ الصلوۃ والسلم کی وفات کے بعد ب ہت جلسسد بنسسی اسسسرائیل ایسسک‬
‫عظیم اخلقی انحطاط )‪ (Moral Degeneration‬کا شکار ہو گئے۔ اس انحطسساط کسسی‬
‫تاریخ خود ان کے اپنے مورخین نے بیان کسسی ہے۔ بائبسسل میسسں "اسسستثنا" کسے بعسسد کسسی‬
‫کتابوں میں اس اخلقی انحطسساط کسسو ب ہت تفصسسیل سسے بیسسان کیسسا گیسسا ہے۔ ان کسی‬
‫اخلقیات اس درجے میں تباہ ہو چکی تھیں کہ انہوں نے اللہ تعالی کسسی کتسساب تسسورات‬
‫کو بھی نہ چھوڑا اور اس میں اپنی مرضی کی تبدیلیاں کرنے لگے۔ "نظریہ ضرورت"‬
‫کے تحت تورات میں من گھڑت احکام داخل کئے گئے۔‬

‫دور انحطاط میں غلمی س ے متعلق‬
‫احکام میں تحریف‬
‫انسانی حقوق کو صرف اسرائیلیوں س ے مخصوص‬
‫کرن ے ک ے لئ ے تورات میں تحریف‬
‫تورات میں انسانی حقوق سے متعلسق جسو قسوانین بنسائے گئے ت ھے‪ ،‬ان کسا اطلق نسہ‬
‫صرف اسرائیلیوں پر ہوتا تھا بلکہ تورات کی کتاب احبار میں آیت نمسسبر ‪ 19:34‬ک سے‬
‫حکم کے مطابق سلطنت اسرائیل کی حدود میں رہنے والے تمسسام باشسسندے‪ ،‬خسسواہ وہ‬
‫اسرائیلی ہوں یا نہ ہوں‪ ،‬ان حقوق کے مستحق تھے۔ ان حضسسرات ن سے تمسسام انسسسانی‬
‫حقوق کو "عبرانیوں" کے ساتھ خاص کر لیا اور دیگر اقوام کو “‪ ”Gentiles‬قسسرار دے‬
‫کر ان کے استحصال کی اجازت دے دی۔ سودی لین دین‪ ،‬جو شریعت موسوی میں‬
‫حرام تھا اور غلمی کا ایک اہم سبب تھا‪ ،‬کو دیگر اقوام کے معاملے میں جائز قسسرار‬
‫دے دیا گیا۔ اس دور میں ان خدائی قوانین میں جو اضافے کئے گئے‪ ،‬وہ خسسط کشسسیدہ‬
‫عبارت میں موجودہ بائبل کے الفاظ بیان کئے گئے ہیں‪:‬‬
‫• "تمہارے غلم اور تمہاری کنیزیں ان قوموں میں سے ہوں جو تمہارے ارد گسسرد ر ہتی ہیسسں‪،‬‬
‫انہی سے تم غلم اور لونڈیاں خریدا کرنا۔" )استثنا باب ‪(25‬‬
‫• "تمہارے درمیان عارضی طور پر رہنے والوں اور ان کے گھرانوں کے ان افسسراد میسسں س سے‬
‫بھی جو تمہارے ملک میں پیدا ہوئے‪ ،‬کچھ کو خرید سکتے ہو اور وہ تمہاری ملکیت ہوں گے۔"‬
‫)استثنا باب ‪(25‬‬
‫• "تم انہیں میراث کے طور پر اپنی اولد کے نام کر سکتے ہو اور یوں انہیسسں عمسسر ب ھر کسے‬
‫لئے غلم بنا سکتے ہو۔" )استثنا باب ‪(25‬‬
‫• "تم چاہو تو پردیسیوں سے سود وصول کرنا لیکن کسسسی اسسسرائیلی ب ھائی سسے نہیسسں۔"‬
‫)استثنا باب ‪(23‬‬

‫غلموں س ے متعلق قوانین میں ترامیم و اضاف ے‬
‫پہلے سے موجود خدائی قوانین میں جو ترامیم کی گئیں‪ ،‬ان کی تفصیل یہ ہے‪:‬‬
‫• کتاب خروج باب ‪ 21‬میں چھ سال کی سروس بعسسد غلم اور اس کسے بیسسوی‬
‫‪39‬‬

‫بچوں کو آزاد کرنے کا جو حکم دیا گیا تھا‪ ،‬اس میں یہ تبدیلی کسسر دی گئی ک سہ‬
‫"اگر اس کا بیاہ اس کے آقا نے کروایا ہو اور اس عورت کے اس سے بیٹسے اور بیٹیسساں ب ھی‬
‫ہوئی ہوں تو وہ عورت اور اس کے بچے آقا کے ہوں گے اور صرف آدمی آزاد کیا جائے گا۔"‬
‫• کتاب استثنا باب ‪ 15‬کے مطابق چھ سال بعد آزادی کا حکم مرد اور عورت‬

‫دونوں قسم کے غلموں کے لئے تھا۔ اس قانون میں تبدیلی کر کے ی سہ ک ہہ دیسسا‬
‫گیا کہ "کنیز غلموں کی طرح )چھ برس بعد( آزاد نہ کی جائے۔" اپنی بیٹیوں کو بائبسسل‬
‫کے دیگر صریح احکام کے خلف بطور کنیز بیچنے کسسی اجسسازت دے دی گئی۔ )خروج‬
‫باب ‪(21‬‬
‫• کتاب خروج باب ‪ 21‬میں غلم پسسر تشسسدد کسسر کسے اسسے قتسسل کسسر دینسے کسسی‬
‫صورت میں جو سزا تورات نے نافذ کی تھی‪ ،‬اس میں یہ اضافہ کر دیا گیا کسسہ‬
‫یہ معاملہ صرف اس صورت میں ہے کہ اگر غلم فورا ً مر گیا ہو‪" ،‬لیکسسن اگسسر وہ‬
‫ایک دو دن زندہ رہے تو اسے سزا نہ دی جائے‪ ،‬اس لئے کہ وہ اس کی ملکیت ہے۔" تحریسسف‬
‫کرنے والوں کو یہ خیال نہ آیا کہ غلم اگر تشدد کے نتیجے میں فورا ً مر جائے یا‬
‫ایک دو دن بعد‪ ،‬اس سے اس کے آقا کے جرم کی نوعیت میں کیا فسسرق واقسسع‬
‫ہوا ہے۔ اس کا جرم تو ایک ہی ہے۔‬
‫• جنگی قیدیوں کے لئے یہ قانون بنایا گیا ت ھا کسہ ان میسسں شسسامل خسسواتین سسے‬
‫اسرائیلی ان کی مرضی سے شادی کر سکتے ہیں۔ اس قانون کسسو تبسسدیل کسسر‬
‫کے صلح کرنے والوں کو بھی غلم بنانے کی اجازت دے دی گئی۔ "جب تم کسی‬
‫شہر پر حملہ کرنے کے لئے اس کے قریب پہنچو تو اس کے باشندوں کو صسلح کسا پیغسسام دو۔‬
‫اگر وہ اسے قبول کر کے اپنے پھاٹک کھول دیں تو اس میں کے سب لسسوگ بیگسسار میسسں کسسام‬
‫کریں اور تمہارے مطیع ہوں۔ )استثنا باب ‪(20‬‬

‫حام کی غلمی کا فرضی قص ہ‬
‫• کتاب پیدائش میں ایک فرضی قصہ داخل کیسا گیسا جسس کسے مطسابق سسیدنا‬
‫نوح علیہ الصلوۃ والسلم کے بیٹے حام نے اپنے والسسد س سے کچ سھ بسسدتمیزی کسسی‬
‫جس پر انہوں نے حام کو بددعا دی کہ "حام‪ ،‬اپنسے ب ھائیوں سسسام اور یسسافث کسسا غلم‬
‫ہو۔" اس قصے کی بدولت انہوں نے حام کی اولد یعنی افریقیسوں کسی غلمسسی‬
‫کا جواز پیدا کیا۔انہوں نے اس بات کا خیسسال نہیسسں کیسسا کسہ اگسسر حسام نسے کسسوئی‬
‫بدتمیزی کی بھی تھی تو اس کی سزا ان کی پوری اولد کو دینا کس قسسانون‬
‫کے تحت درست ہو گا۔‬
‫یہاں ایک سوال پیدا ہوتا ہے کہ قرآن مجید بسسار بسسار ی ہود کسسو ان کسے آبسسا ؤ اجسسداد کسے‬
‫جرائم یاد دلتا ہے تو ایسا کیوں ہے؟ اولد تو اپنے آباء کی غلطیوں کی ذم سہ دار نہیسسں‬
‫ہے۔ نزول قرآن کے وقت بنی اسرائیہل ایک غلط فہمی میں مبتل تھہہے کسہ چسسونکہ ہ ہم‬
‫نیک لوگوں کی اولد ہیں‪ ،‬اس لئے ہماری نجات پکی ہے اور ہم سسیدھے جنسست میسں‬
‫جائیں گے۔ قرآن مجید نے انہیں ان کی اپنی تاریخ سے مثال پیش کی کہ تمہارے آبا ؤ‬
‫اجداد کو ان کے جرائم کی سزا ملی ہے‪ ،‬بالکل اسی طرح تمہیں بھی تمہارے جرائم‬
‫کی سزا ملے گی۔ حقیقت یہ ہے کہ قرآن مجید نے آباء ک سے جسسرم کسسی سسسزا اولد کسسو‬
‫ہرگز نہیں دی۔‬

‫‪40‬‬

‫تورات میں کی جان ے والی تحریفات‬
‫پر تبصر ہ‬
‫ممکن ہے موجودہ دور ک سے ی ہودی ا ہل علسسم ہمسساری دی گئی تفصسسیلت سسے اختلف‬
‫کریں۔ ہم نے تورات کی جن آیات کو بعد کی ایجاد کردہ آیات میں شمار کیسسا ہے‪ ،‬وہ‬
‫انہیں خدا کا حکم ہی سمجھتے ہوں۔ اگر ایسا ہی ہو تو ان سے ہماری گزارش ی سہ ہو‬
‫گی کہ وہ ان آیات کی اس آیت سے مطابقت پیدا کر کے دکھائیں جسسس ک سے مطسسابق‬
‫پردیسیوں )‪ (Gentiles‬سے وہی سلوک کرنا ضروری تھا جو اسرائیلی سے کیا جسسائے۔‬
‫اس آیت اور ان آیات جن میں غیر اسرائیلیوں کسسو غلم بنسسانے کسسی اجسسازت دی گئی‬
‫ہے‪ ،‬ایک واضح تضاد نظر آتا ہے‪ ،‬جسے رفع کرنا کسی کے لئے ممکن نہیسسں ہہہے۔ آیسست‬
‫کو ہم دوبارہ درج کر رہے ہیں‪:‬‬
‫"کوئی پردیسی )غیر قوم کا فرد( تمہارے ساتھ تمہارے ملک میسسں رہتسا ہو تسو اس کسے سساتھ‬
‫بدسلوکی نہ کرنا۔ جو پردیسی تمہارے ساتھ رہتا ہو اس سے دیسی )اسرائیلی( جیسسسا برتسساؤ‬
‫کرنا بلکہ تم اس سے اپنے ہی مانند محبت کرنا کیونکہ تم بھی مصر میں پردیسی تھے۔ میسسں‬
‫خداوند تمہارا خدا ہوں۔" )احبار باب ‪(19‬‬

‫ممکن ہے کہ بعض حضرات یہ کہیں کہ ہمیں یہ کیسے علم ہوا کہ یہ تفصیلت بعسسد کسسی‬
‫تحریفات پر مشتمل ہیں۔ اس کے لئے ہمارا استدلل یہ ہے کہ الل سہ تعسسالی ک سے نزدیسسک‬
‫اس کی تمام مخلوق برابر ہے۔ وہ اپنی پوری مخلوق سے محبسست کرتسسا ہے۔ انسسسانی‬
‫جان‪ ،‬مال‪ ،‬آبرو اور آزادی کی حرمت ایسا معاملہ ہے جسسے کسسسی مخصسسوص گسسروہ‬
‫کے ساتھ اللہ تعالی نے کبھی خاص نہیں کیا۔ انسانوں نے تو اپن سے مفسساد کسے لئے ایسسسا‬
‫کیا ہے لیکن کائنات کا خدا کبھی ایسا نہیں کر سکتا۔‬
‫اللہ تعالی نے اپنی ہدایت کے ہر ورژن میں ایک انسان )نہ کہ صسساحب ایمسسان( کسے‬
‫قتل کو پوری انسانیت کا قتل قسرار دیسا ہے۔ ی ہی معساملہ غلمسی کسا ہے۔ یسہ بنیسادی‬
‫انسانی حقوق ہیں جن کے معاملے میں مسسذہب‪ ،‬قسسوم اور رنسسگ کسسی بنیسساد پسسر کسسوئی‬
‫امتیاز کرنا کبھی درست نہیں ہو گا۔‬

‫دور انحطاط میں مبعوث ہون ے وال ے‬
‫انبیاء کرام کی تنبی ہات‬
‫بنی اسرائیل کے دور انحطاط میں اللہ تعالی نے جن انبیاء کو مبعوث فرمایا‪ ،‬ان ہوں‬
‫نے بنی اسرائیل کو ان کی غلط کاریوں پر کڑی تنسبیہ کسی اور انہیسں ان نافرمسانیوں‬
‫کی بدولت آنے والے خدائی عذاب سے خبردار کیا۔ ان غلط کاریوں میں "غلم بنانا"‬
‫بھی شامل تھا۔ کچھ تفصیلت یہ ہیں‪:‬‬
‫• بائبل میں سیدنا عسساموس علیسہ الصسسلوۃ والسسسلم )‪ (740BC-793‬کسسی کتسساب‬
‫اسرائیلیوں پر اللہ تعالی کی طرف سے عذاب کی وارننگ ہے۔ اس میسسں غسسزہ‬
‫کے علقے کے رہنے والوں کے جو جسسرائم گنسسوائے گئے ہیسسں‪ ،‬ان میسسں غلم بنانسسا‬
‫بھی شامل ہے۔ "غزہ کے تین بلکہ چار گناہوں کے باعث میں اپنے غضسسب سسے بساز نسہ آؤں‬
‫گا۔ چونکہ اس نے سارے گروہوں کو اسیر کر لیا اور انہیں ادوم کے ہاتھ بیسسچ دیسسا۔ میسسں غسسزہ‬
‫کے شہر پناہ پر آگ بھیجوں گا جو اس کے قلعوں کو کھا جائے گی۔" )عاموس‪ ،‬باب ‪(1‬‬
‫• اسی دور انحطاط میں سیدنا یسعیاہ علیہ الصلوۃ والسلم )‪(681BC – 740‬‬
‫کی بعثت ہوئی جنہوں نے غلموں کو آزاد ہونے کی بشارت دی۔ "اس نے مج ھے‬
‫اس لیے بھیجا ہے کہ میں شکستہ دلوں کو تسلی دوں‪ ،‬قیدیوں )غلموں( کے لئے ر ہائی کسسا‬
‫‪41‬‬

‫اعلن کروں اور اسیروں کو تاریکی سے رہا کروں۔" )یسعیاہ باب ‪(61‬‬

‫اسی عرصے میں اللہ تعالی نے سیدنا یرمیاہ علیہ الصلوۃ والسسسلم )‪(580BC – 627‬‬
‫کو بنی اسرائیل کی طرف مبعوث کیا۔ انہوں نے انحطاط زدہ بنسسی اسسسرائیل کسسو ان‬
‫کے جرائم کی چارج شیٹ پڑھ کر سنائی۔ ان جرائم میں غلم بنانا ب ھی شسسامل ت ھا‬
‫)یرمیاہ باب ‪(2‬۔ بائبل کی کتاب یرمیساہ میسسں اس کسے بعسسد بنسی اسسسرائیل کسسو آخسری‬
‫وارننگ دی گئی ہے کہ اگر انہوں نے اللہ تعالی کی شریعت پر عمل کرنا شروع نہ کیا‬
‫تو پھر ان پر عظیم عذاب آنے وال ہے اور عنقریب اسرائیلیوں کی دونوں سسسلطنتیں‬
‫یہوداہ اور اسرائیل تباہ ہونے والی ہیں۔ یہ سزا بنی اسسسرائیل کسے قتسل اور انہیسسں غلم‬
‫بنا لئے جانے کی صورت میں ان پر نافذ کی جائے گی۔ بعد کی تاریخ گواہ ہے کسہ پ ھر‬
‫ایسا ہی ہوا۔‬

‫ی ہودیوں ک ے بعد ک ے ادوار میں غلمی‬
‫یہودیوں کی ایک خوبی یہ رہی ہے کہ انہوں نے کم از کم اپنی قوم کے بارے میں بائبل‬
‫کے ان احکامات پر عمل کیا۔ اگر ان کا کوئی ہم مذہب کسی جنسسگ میسسں قیسسدی ہو‬
‫جائے تو وہ اسے فدیہ ادا کر کے آزاد کرواتے تھے۔ "یہودیوں کی تاریخ" کے مصنف پال‬
‫جانسن نے اپنی کتاب میں اس رواج کا تذکرہ کیا ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیسسہ و ٰالسسہ‬
‫وسلم کے دور میں جو یہود مدینہ میں آباد تھے۔ ان کے ہاں بھی یہی معمول تھا جس‬
‫کا ذکر قرآن مجید میں کیا گیا ہے۔‬
‫ثُ َ‬
‫ن فَ‬
‫م هَ ُ‬
‫م‬
‫ن َأن ُ‬
‫ؤلء ت َ ْ‬
‫م وَت ُ ْ‬
‫م ِ‬
‫ريقا ً ِ‬
‫م ت َت َظ َسساهَُرو َ‬
‫جو َ‬
‫خرِ ُ‬
‫قت ُُلو َ‬
‫ف َ‬
‫ن ع َل َي ْهِ س ْ‬
‫ن د ِي َسسارِه ِ ْ‬
‫من ْك ُ ْ‬
‫سك ُ ْ‬
‫م أن ْت ُ ْ‬
‫ّ‬
‫مس ْ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫ساَرى ت ُ َ‬
‫م إِ ْ‬
‫م أفت ُؤ ْ ِ‬
‫من ُسسو َ‬
‫خَرا ُ‬
‫م َ‬
‫ن وَإ ِ ْ‬
‫ح سّر ٌ‬
‫مأ َ‬
‫جه ُ س ْ‬
‫م ع َلي ْك س ْ‬
‫م وَهُوَ ُ‬
‫فاُدوهُ ْ‬
‫ن ي َأُتوك ْ‬
‫ِبال ِث ْم ِ َوالعُد َْوا ِ‬
‫ْ‬
‫ض۔ )‪(2:85‬‬
‫ع‬
‫ب‬
‫ب‬
‫ن‬
‫رو‬
‫ُ‬
‫ف‬
‫ك‬
‫ت‬
‫و‬
‫ض ال ْك َِتا ِ‬
‫ب ََ ُ َ َِْ ٍ‬
‫ب ِب َعْ ِ‬
‫اس کے بعد تم اپنے افراد کو قتل کرتے ہو اور اپن سے ایسسک گسسروہ کسسو ان ک سے گ ھروں س سے جل‬
‫وطن کرتے ہو اور ظلم و زیادتی کے ساتھ ان کے خلف جتھہ بندی کرتے ہو۔ اس کے بعد اگسسر‬
‫انہیں جنگی قیدی بنا لیا جائے تو تم ان کا فدیہ دیتے ہو جبکہ انہیں گھروں سے جل وطن کرنسسا‬
‫ہی تمہارے لئے حرام ہے۔ کیا تم کتاب )تورات( کے بعض حصسسوں کسسو مسسانتے ہہہو اور بعسسض کسسا‬
‫انکار کرتے ہو؟‬

‫بعد کے ادوار میں یہودی علماء کے ہاں غلمی کے جواز اور عدم جواز کے بارے میسسں‬
‫اختلف رائے پایا جاتا ہے۔ ایسین )‪ (Essene‬فرقے کے علماء نے غلمسسی کسسو کھلسسم کھل‬
‫خدا کی مرضی کے خلف قرار دیا۔ یہی وہ فرقہ ہے جس کے بارے میں تاریخ میسسں ی سہ‬
‫ملتا ہے کہ انہوں نے اپنی کمیونٹی میں غلمی کا مکمل خاتمہ کر لیا تھا۔‬

‫‪42‬‬

‫باب ‪ :5‬روم میں غلمی‬
‫سلطنت روما‪ :‬عیسائیت س ے پ ہل ے‬
‫غلمی کی بدترین مثال‬
‫سلطنت روم ماضی کی عظیم ترین سلطنت رہی ہے۔ اس کسسا اقتسسدار ‪ 200BC‬س سے‬
‫شروع ہو کر کم و بیش ‪ 1500‬عیسوی تک جاری ر ہا۔ غلمسوں سسے متعلسق رومسی‬
‫قوانین اپنی ہم عصر سلطنتوں سے کافی مختلف تھے۔ ان قسسوانین کسسو غلمسسی س سے‬
‫متعلق سخت ترین قوانین قرار دیا جا سکتا ہے۔ پروفیسر کیتھ بری سڈلے اپن سے آرٹیکسسل‬
‫"قدیم روم میں غلموں کی مزاحمت )‪ "(Resisting Slavery in Ancient Rome‬میں‬
‫اس دور کی غلمی کا نقشہ کھینچتے ہوئے لکھتے ہیں‪:‬‬
‫روم اور اٹلی میں‪ 200 ،‬قبل مسیح سے لے کر ‪ 200‬عیسسسوی تسسک‪ ،‬کسسی چسسار صسسدیوں میسسں‬
‫آبادی کا چوتھائی بلکہ تہائی حصہ غلموں پر مشتمل تھا۔ اس دوران کروڑوں کی تعداد میں‬
‫مرد‪ ،‬خواتین اور بچے کسی بھی قسم کے حقوق کے بغیر رہتے رہے ہیں گویسسا کسہ قسسانونی اور‬
‫معاشرتی طور پر وہ سرے سے وجود ہی نہیں رکھتے۔ وہ انسان ہی نہیں سمجھے جاتے تھے۔‬
‫پلوٹرک کی بیان کردہ معلومات کے مطابق کسی غلم کا نسسام ہی نسہ ہوا کرتسسا ت ھا۔ انہیسسں‬
‫کوئی چیز اپنی ملکیت میں رکھنے‪ ،‬شادی کرنے یا قانونی خاندان رکھنے کی کوئی اجازت نہ‬
‫ہوا کرتی تھی۔ غلموں کا مقصد یا تو محض محنت کرنے والے کارکنوں کا حصول ہہہوا کرتسسا‬
‫تھا یا پھر یہ اپنے آقاؤں کی دولت کے اظہار کے لئے اسٹیٹس سمبل کے طور پسسر رک ھے جسساتے‬
‫تھے۔ اگرچہ کچھ غلموں کے ساتھ اچھا سلوک اختیار کیا جاتا ت ھا لیکسسن ان ک سے مسسالکوں ک سے‬
‫قانونی اختیارات پر بہت ہی کم قدغنیں عائد کی گئی تھیں۔ غلموں کسسو جسسسمانی سسسزائیں‬
‫دینا اور ان کا جنسی استحصال کرنا عام تھا۔‬
‫اپنی تعریف کے لحاظ سے ہی غلمی ایک وحشی‪ ،‬متشددانہ اور غیر انسانی ادارہ تھا جس‬
‫میں غلم کی حیثیت محض ایک جانور کی سی تھی۔ ہمیں بہت ہی کم ایسا ریکارڈ ملتسسا ہے‬
‫جس میں غلمی سے متعلق خود رومی غلموں کے تاثرات کو بیان کیا گیا ہو۔‬
‫‪http://www.bbc.co.uk/history/ancient/romans/slavery_02.shtml‬‬

‫کے ایس لل نے رومی غلمی کی مزید خصوصیات بیان کی ہیں‪:‬‬
‫• رومی غلم زیادہ تر وہ ہوا کرتے تھے جو یا تو جنگوں میں پکڑے جائیں یا پ ھر‬
‫وہ جو اپنے قرضے ادا نہ کر سکیں۔‬
‫• ان غلموں کو قطعی طور پر کوئی حقسسوق حاصسسل نسہ ت ھے۔ انہیسں معمسسولی‬
‫غلطیوں پر بھی موت کی سزا دی جا سکتی تھی۔‬
‫• غلم اتنی کثیر تعداد میں تھے کہ بادشاہ آگسٹس ک سے دور میسسں ایسسک شسسخص‬
‫چار ہزار غلم بطور جائیداد کے چھوڑ کر مرتا تھا۔‬
‫• کسسثیر تعسسداد میسسں موجسسود غلمسسوں کسسو کنسسٹرول کرنسے کسے لئے انہیسسں دائمسسی‬
‫ہتھکڑیاں اور بیڑیاں پہنا دی جاتی تھیں جو وہ سوتے وقت بھی اتسسار ن سہ سسسکتے‬
‫تھے۔‬
‫• آقاؤں کی تفریح کے لئے غلموں کو ایسسک دوسسسرے یسسا وحشسسی درنسسدوں س سے‬
‫لڑایا جاتا۔ ان غلموں کو اس کی باقاعدہ تربیت دی جاتی اور ان لڑائیوں کسسا‬
‫نتیجہ کسی ایک کی موت کی صورت ہی میں نکلتا۔ ایسے غلموں کسسو گلی سڈی‬
‫‪43‬‬

‫ایٹر )‪ (Gladiator‬کہا جاتا تھا۔ فتح یاب غلم کو آزادی دینا اس کے مالکوں اور‬
‫تماشائیوں کی صوابدید پر منحصر ہوا کرتا تھا۔‬

‫غلموں کی بغاوتیں‬
‫غلمی کی اس بدترین شکل کے نتیجے میں رومی سلطنت میں بہت سسسی بغسساوتیں‬
‫بھی ہوئیں۔ رومی سلطنت میں غلموں کی بہت سسسی بغسساوتوں کسسا تسسذکرہ ملتسسا ہے۔‬
‫کیتھ بریڈلے کا آرٹیکل انہی بغاوتوں کے بارے میں ہے۔ ان کسی فرا ہم کسردہ معلومسات‬
‫کے مطابق ان میں سب س سے مش سہور بغسساوت ‪ 71BC-73‬میسسں ہوئی جسسس کسسا لی سڈر‬
‫مشہور گلیڈی ایٹر اسپارٹکس تھا۔ اس بغاوت میں بہت سے غلموں نے حصہ لیسسا اور‬
‫اس بغاوت کے نتیجے میں سلطنت روما تباہ ہوتے ہوتے بچی۔ بغسساوت ناکسسام ر ہی اور‬
‫اسپارٹکس کو قتل کر دیا اور اس کے ہزاروں پیروکاروں کو صلیب پر چڑھا دیا گیسسا‬
‫جو کہ رومیوں کا عام طریق کار تھا۔‬
‫رومی ہمیشہ ان بغاوتوں سے خائف رہے۔ ایک مرتبہ روم کے سینٹ میں یہ خیسسال‬
‫پیش کیا گیا کہ غلموں کو علیحسسدہ لبسساس پہنایسسا جسسائے جسسس س سے ان کسسی السسگ سسے‬
‫شناخت ہو سکے لیکن اس خیال کو مسترد کر دیا گیا کیونکہ اس طریقے سسسے غلم‬
‫ایک دوسرے کو پہچان کر اپنی قوت سے آگاہ ہو سکتے تھے۔‬
‫رومی غلمی اس حد تک خوفناک تھی کہ روم کے مقابلے پر لڑنے والوں کو اگسسر‬
‫اپنی شکست کا یقین ہو جاتسا تسو یسہ لسسوگ اس غلمسی سسے محفسسوظ رہنسے کسے لئے‬
‫اجتماعی طور پر خود کشی کر لیا کرتے تھے۔ دوسری طرف بعسسض غلم تنسسگ آ کسسر‬
‫اپنے مالکوں کو بھی قتل کر دیا کرتے تھے۔ ایسی صورت میں یہ قانون بنایسسا گیسسا ک سہ‬
‫اگر قاتل پکڑا نہ جا سکے تو اس شخص کے تمام غلموں کو ہلک کر دیا جائے۔‬
‫بہت سے غلموں نے فرار کا راستہ بھی اختیار کیسا۔ رومیسسوں نسے اس کسے جسواب‬
‫میں غلموں کو پکڑنے کی ایک تربیت یافتہ پولیس تیار کی۔ یسہ پسسولیس راسسستوں اور‬
‫جنگلوں میں غلموں کی تلش کسسی مسساہر ہوا کرتسسی ت ھی۔ ان غلمسسوں کسسو باقاعسسدہ‬
‫جنگلی جانوروں کی طرح شکار کیا جاتا۔ پکڑے جانے وال سے غلم پسسر تشسسدد ک سے بعسسد‬
‫اس کے گلے میں لوہے کا ایک دائمی طوق پہنا دیا جاتا۔‬

‫سلطنت روما‪ :‬دور عیسائیت میں‬
‫سیدنا عیسی علیہ الصلوۃ والسلم )‪ (33BC – 0CE‬کی بعثت بنی اسرائیل میں اس‬
‫دور میں ہوئی جب اسرائیلی اپنے عروج کا زمانہ دو مرتبہ گسزار چکسے ت ھے۔ ی ہود کسا‬
‫دوسرا عروج سیدنا عزیر علیہ الصلوۃ والسلم ک سے دور میسسں ہوا ت ھا۔ اس ک سے بعسسد‬
‫اسرائیلی دوبارہ اخلقی انحطاط کا شکار ہو کر پہلے یونان اور پھر روم کی غلمسسی‬
‫میں جا چکے تھے۔ آپ کی بعثت کے وقت فلسطین کے علقے پر اگرچ سہ ایسسک ی ہودی‬
‫بادشاہ "ہیرودوس" کی حکومت تھی لیکن اس کی ریاست مکمل طور پسسر رومنسسائز‬
‫ہو چکی تھی اور اس کی حیثیت روم کے ایک گورنر کی سی تھی۔‬
‫ان کے حکمرانوں کے کردار کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سسسکتا ہے ک سہ محسسض‬
‫ایک رقاصہ کی فرمائش اپنی قوم کے صالح ترین شخص‪ ،‬یحیی )‪(John the Baptist‬‬
‫علیہ الصلوۃ والسلم کا سر قلم کر کے اس کے حضور پیش کر دیسسا گیسسا ت ھا۔ سسسیدنا‬
‫یحیی علیہ الصلوۃ والسلم کو بادشاہ بھی صالح ترین مانتا ت ھا۔ آپ کسسا جسسرم صسسرف‬
‫اتنا تھا کہ آپ نے بادشاہ کو اپنی سوتیلی بیٹی سے شادی کرنے سے منع فرمایا تھا۔‬

‫‪44‬‬

‫غلموں اور پست طبقات س ے متعلق سیدنا عیسی‬
‫علی ہ السلم کی تعلیمات‬
‫سیدنا مسیح علیہ الصلوۃ والسلم پر جو لوگ ایمان لئے‪ ،‬وہ معاشرے کے اس طبق سے‬
‫سے تعلق رکھتے تھے جن کا سیاسسسی اثسسر و رسسسوخ نسہ ہونے کسے برابسسر ت ھا۔ آپ کسے‬
‫قریبی صحابہ میں سیدنا پطرس‪ ،‬اندریاس‪ ،‬یعقوب اور یوحنا رضی الل سہ عن ہم گلیسسل‬
‫کی جھیل کے مچھیرے اور سیدنا متی رضی اللہ عنہ محض ایک سرکاری ملزم تھے۔‬
‫اس صورت حال میں غلمی سے متعلق کوئی اقدام کرنا آپ کے لئے ممکن ن سہ ت ھا۔‬
‫آپ نے معاشرے کے پست ترین طبقات کو‪ ،‬جن میں غلم بھی شامل تھے‪ ،‬مخسساطب‬
‫کرتے ہوئے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫مبارک ہیں وہ جو دل کے غریب ہیں کیونکہ آسمان کی بادشاہی ان کے لئے ہے۔ مبسسارک ہیسسں‬
‫وہ جو غمگین ہیں کیونکہ وہ تسلی پائیں گے۔ مبارک ہیں وہ جو حلیم ہیں کیونکہ وہ زمیسسن ک سے‬
‫وارث ہوں گے۔ مبارک ہیں وہ جنہیں راستبازی کی بھوک و پیاس ہے کیسونکہ وہ سسیراب ہوں‬
‫گے۔ مبارک ہیں وہ جو رحمدل ہیں کیونکہ ان پر رحم کیا جائے گا۔ مبارک ہیں وہ جو پسساک دل‬
‫ہیں کیونکہ وہ خدا کو دیکھیں گے۔ مبارک ہیں وہ جو صلح کرواتے ہیں کیونکہ وہ خسسدا کسے بیٹسے‬
‫)محبوب( کہلئیں گے۔ مبارک ہیں وہ جو راستبازی کے سبب ستائے جاتے ہیں کیسسونکہ آسسسمان‬
‫کی بادشاہی )جنت( انہی کے لئے ہے۔ )متی باب ‪(5‬‬
‫اے محنت مشقت کرنے والو! اور وزنی بوجھ اٹھانے والو! تم میرے پاس آؤ‪ ،‬میں تمہیسسں آرام‬
‫پہنچاؤں گا۔ )متی‪(11:28 ،‬‬

‫آپ نے غلموں کو آزادی کی بشارت دیتے ہوئے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫خداوند کا روح مجھ پر ہے۔ اس نے مجھے مسسح کیسسا ہے‪ ،‬تسساکہ میسں غریبسسوں کسو خوشسسخبری‬
‫سناؤں‪ ،‬اس نے مجھے بھیجا ہے تاکہ میں قیدیوں کو ر ہائی اور انسسدھوں کسسو بینسسائی کسسی خسسبر‬
‫دوں‪ ،‬کچلے ہوؤں کو آزادی بخشوں اور خداوند کے سال مقبول کا اعلن کروں۔ )لوقسسا بسساب‬
‫‪(4‬‬

‫آپ نے تمام انسانوں کو برابر اور ایک دوسرے کا بھائی قرار دیا اور یہود کے علماء‪،‬‬
‫جو سیدنا موسی علیہ الصلوۃ والسلم کی جانشینی کا منصسسب سسسنبھالے ہوئے ت ھے‪،‬‬
‫کو تنبیہ کرتے ہوئے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫شریعت کے عالم اور فریسی موسی )علیہ الصلوۃ والسلم( کی گدی پر بیٹھے ہیں۔ لہذا جسسو‬
‫کچھ یہ تمہیں سکھائیں اسے مانو اور اس پر عمل کسسرو۔ لیکسسن ان ک سے نمسسونے پسسر مسست چلسسو‬
‫کیونکہ وہ کہتے تو ہیں مگر کرتے نہیں۔ وہ ایسے بھاری بوجھ جنہیں اٹھانا مشکل ہے‪ ،‬بانسسدھ کسسر‬
‫لوگوں کے کندھوں پر رکھتے ہیں اور خود انہیسسں انگلسسی ب ھی نہیسسں لگسساتے۔ وہ ضسسیافتوں میسسں‬
‫صدر نشینی چاہتے ہیں اور عبادت خانوں میں اعلی درجے کی کرسسسیاں‪ ،‬اور چسساہتے ہیسسں ک سہ‬
‫بازاروں میں لوگ انہیں جھک جھک کر سلم کریں اور 'ربی' کہہ کر پکاریں۔ لیکن تم ربی نسہ‬
‫کہلؤ کیونکہ تمہارا رب ایک ہی ہے اور تم سب بھائی بھائی ہو۔ )متی باب ‪(23‬‬

‫انجیل میں آپ کے کچھ ایسے ارشادات پائے جاتے ہیں جن میسسں آپ ن سے غلمسسوں کسسو‬
‫اپنے مالکوں کا وفادار رہنے کی تلقین کی ہے لیکن اس سے یہ قطعی طور پسسر ثسسابت‬
‫نہیں ہوتا کہ آپ غلمی کو برقرار رکھنے کے قسائل ت ھے۔ ان ارشسادات کسا تعلسق غلم‬
‫اور آقا کے تعلقات کو بہتر بنانے سے تھا۔‬
‫غلمی کے خاتمے سے متعلق آپ کو علیحدہ سے تعلیم دینے کی ضرورت نہ تھی۔‬
‫اس کی وجہ یہ تھی کہ آپ کوئی نئی شریعت نہ لئے تھے۔ غلمی کو ختم کرن سے سسسے‬
‫متعلق شریعت موسوی میں جو تعلیمات موجود تھیں‪ ،‬انہی پر اگر صسسحیح روح ک سے‬
‫ساتھ عمل کر لیا جاتا تو غلمی کسے اثسسر کسسو کسسم کیسسا جسسا سسسکتا ت ھا۔ آپ نسے ارشسساد‬
‫فرمایا‪:‬‬
‫یہ نہ سمجھو کہ میں موسی کی کتاب‪ ،‬شریعت اور نبیوں کی تعلیمات کو منسوخ کرنے کسسے‬
‫‪45‬‬

‫لئے آیا ہوں۔ میں ان کو منسوخ کرنے کی بجائے انہیں پورا کرنے کے لئے آیا ہوں۔ )متی‪ ،‬بسساب‬
‫‪(5‬‬

‫ہاں ایسا ضرور تھا کہ تورات میں علمائے یہود نے جو تحریفات کسسر رکھہہی تھیسسں‪ ،‬ان‬
‫سے تورات کو پاک کرنا ضروری تھا۔ آپ نے اپنی تعلیمات میں یہود کی شریعت کے‬
‫ان پہلوؤں کی طرف توجہ ضرور دلئی اور بتایا کہ یہ بوجھ اللہ تعالی نے نہیں بلکسہ ان‬
‫کے مذہبی راہنماؤں نے ان پر عائد کیے ہیں۔ افسوس کہ سسسیدنا عیسسسی علیسہ الصسسلوۃ‬
‫والسلم کے سوانح نگاروں نے یہ تفصیلت مکمل طور پر ریکارڈ نہیں کیسسں البت سہ اس‬
‫کے بعض اشارات انجیلوں میں ملتے ہیں۔ اگر آپ کی مکمل تعلیمات کو ریکارڈ کسسر‬
‫لیا جاتا تو یقینی طور پر اس میں ہمیں خسسدا کسسی اصسسل شسسریعت اور انسسسانوں کسسی‬
‫موشگافیوں کی تفصیلت مل جاتیں۔‬
‫سیدنا مسیح علیہ الصلوۃ والسلم کے کچھ عرصے بعد عیسائیوں کی اکثریت نسسے‬
‫سینٹ پال کو بطور مذہبی راہنما کے قبول کر لیا۔ موجودہ دور کی عیسائیت سینٹ‬
‫پال کی مذہبی تعبیرات پر مبنی ہے۔ پال نے آقاؤں کو غلموں کے ساتھ اچ ھا سسسلوک‬
‫کرنے کا حکم دیا اور یہ کہا کہ "خدا کی نظر میں سب برابر ہیں۔" پال کی تعلیمسسات‬
‫سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ ان کے نزدیک موسوی شریعت کی سسسزاؤں ک سے حسسق داروں‬
‫میں لوگوں کو اغوا کر کے انہیں غلم بنانے والے ب ھی شسسامل ت ھے۔ وہ اپنسے شسساگرد‬
‫ٹموتھی کو خط میں لکھتے ہیں‪:‬‬
‫شریعت )غالبا ً حدود و تعزیرات مراد ہیں( راستبازوں کسے لئے نہیسسں بلک سہ بسے شسسرع لوگسسوں‪،‬‬
‫سرکشوں‪ ،‬بے دینوں‪ ،‬گناہ گاروں‪ ،‬نا راستوں‪ ،‬اور ماں باپ کے قسساتلوں اور خونیسسوں کسے لئے‬
‫ہے۔ اور ان کے لئے ہے جو زناکار ہیں‪ ،‬لونڈے باز ہیں‪ ،‬بردہ فروشسسی کرتسے ہیسسں‪ ،‬جھ ہوٹ بسسولتے‬
‫ہیں‪ ،‬جھوٹی قسمیں کھاتے ہیں اور ایسے بہت سے کام کرتے ہیں جسسو اس صسسحیح تعلیسسم کسے‬
‫خلف ہے۔ )ٹموتھی اول‪ ،‬باب ‪(1‬‬

‫انجیل کے بعد کی کتابوں میں عام طور پر غلموں کو اپنے آقسساؤں س سے مخلسسص اور‬
‫فرمانبردار رہنے کی تلقین ملتی ہے۔ دوسری طسسرف آقسساؤں کسسو ب ھی یسہ تلقیسسن کسسی‬
‫جاتی ہے کہ وہ غلموں سے اچھا سلوک کریں اور خدا کی نظسسر میسسں وہ سسسب برابسسر‬
‫ہیں۔ اس تعلیم کا مقصد آقا اور غلم کے تعلق کو بہتر بنانا معلسسوم ہوتسسا ہہہے ک سہ تسساکہ‬
‫غلموں پر موجود سختیوں کو کم از کم عیسائی برادری کسسی حسسد تسسک کسسم کیسسا جسسا‬
‫سکے۔‬
‫تم آزاد لوگوں کی طرح رہو لیکن اپنی آزادی کسو بسدکاری کسا پسردہ مست بنساؤ بلکسہ خسدا کسے‬
‫بندوں کی طرح زندگی بسر کرو۔ سب کی عزت کرو‪ ،‬اپنی برادری سے محبت رک ھو‪ ،‬خسسدا‬
‫سے ڈرو اور بادشاہ کی تعظیم کرو۔ اے غلمو! اپنے مالکوں کے تابع رہو اور ان کسسا ک ہا مسسانو‬
‫چاہے وہ نیک اور حلیم ہوں یا بدمزاج۔ )پطرس باب ‪(2‬‬
‫نوکرو! اپنے دنیاوی مالکوں کی صسسدق دلسسی سسے ڈرتسے اور کسسانپتے ہوئے فرمسسانبرداری کسسرو‬
‫جیسی مسیح کی سی کرتے ہو۔۔۔۔مالکو! تم بھی اپنے نوکروں سے اسسسی قسسسم کسسا سسسلوک‬
‫کرو۔ انہیں دھمکیاں دینا چھوڑ دو کیونکہ تم جانتے ہو کسہ ان کسسا اور تم ہارا دونسسوں کسسا مالسسک‬
‫آسمان پر ہے اور اس کے ہاں کسی کی طرف داری نہیں ہوتی۔ )افسیوں باب ‪(6‬‬
‫نوکرو! اپنے دنیاوی مالکوں کے سب باتوں میں فرمانبردار رہو‪ ،‬نہ صرف دک ھاوے ک سے طسسور‬
‫پر انہیں خوش کرنے کے لئے بلکہ خلوص دلی سے جیسا کہ خداوند کا خوف رکھنے والے کرتے‬
‫ہیں۔۔۔۔۔مالکو! اپنے نوکروں سے عدل و انصاف سے پیش آؤ کیونکہ تم جانتے ہہہو ک سہ آسسسمان‬
‫پر تمہارا بھی ایک مالک ہے۔ )کلسیوں باب ‪(4‬‬

‫عیسائیوں میں بعد ک ے ادوار میں غلمی‬
‫اسمتھ کی تحقیق کے مطابق بعسد کسے ادوار میسں ب ہت سسے عیسسائی ا ہل علسم نسے‬
‫غلمی کو انسانیت کے خلف جرم قرار دیا۔ سسسینٹ اوریجسسن )‪ (185CE – 154‬ن سے‬
‫‪46‬‬

‫ساتویں سسال غلم کسی آزادی کسے قسانون پسر عمسل کرنسے کسی تلقیسن کسی۔ سسینٹ‬
‫گریگوری )‪ (394CE – 335‬نے غلمی کو فطرت اور انسانیت کے خلف قسسرار دیسسا۔‬
‫لیکن عیسائیوں کی اکسثریت نسے اس کسے بالکسل مخسالف سسینٹ آگسسٹائن )‪– 354‬‬
‫‪ (430CE‬کے نظریات کو ترجیح دی جس کے مطابق "غلمی گنسساہ گسسار ک سے لئے خسسدا‬
‫کی سزا ہے۔ غلمی تو جنگی قیدی کے لئے خوش قسمتی ہے ک سہ وہ مرن سے س سے بسسچ‬
‫گیا۔ غلمی سماجی نظام قائم رکھنے کی گارنٹی ہے اور آقا اور غلم دونوں کسے لئے‬
‫فائدہ مند ہے۔" اس کے ساتھ ساتھ انہوں نے عیسائیت قبول کر لینے والے غلموں کسسو‬
‫آزاد کسسر دین سے کسسی تلقیسسن ب ھی کسسی۔ چ ھٹی س سے نسسویں صسسدی عیسسسوی ک سے دوران‬
‫آرتھوڈوکس فرقے کی جانب سے مسلمانوں کو خاص طور پر غلم بنا لینے کا فتوی‬
‫جاری کیا گیا۔‬
‫سسسیدنا عیسسی علیسہ الصسسلوۃ والسسلم کسی انسسسان دوسست تعلیمسسات اور ان کسے‬
‫پیروکاروں کی زبردست دعوتی سرگرمیوں کے کچھ اثرات رومی سلطنت پر ظاہر‬
‫ہونا شروع ہو گئے۔ کے ایس لل لکھتے ہیں‪:‬‬
‫انتھونئس پائس )‪ (161CE – 86‬کے دور میں آقاؤں سسے یسہ حسق چھیسن لیسا گیسا کسہ وہ اپنسے‬
‫غلموں کی زندگی اور موت کا فیصلہ کر سکیں۔ شہنشاہ قسطنطین ) ‪ (CE 337 – 274‬کے‬
‫دور میں یہ قانون بنا دیا گیا کہ آقا کی وراثت تقسیم کرتے وقت اس بات کا خیال رکھا جائے‬
‫کہ تقسیم ہونے والے غلموں میں باپ بیٹے‪ ،‬میاں بیوی‪ ،‬اور بہن بھائی کو الگ نہ کیا جائے۔‬

‫روم میں اگرچہ عیسائی تعلیمات کے تحت غلموں کے حالت قدرے بہتر ہوئے لیکسسن‬
‫اس کے باوجود رومی سلطنت کے خاتمے تسسک غلمسسوں س سے متعلسسق سسسخت قسسوانین‬
‫موجود تھے۔ اس کی وجہ بنیادی طور پر یہ معلوم ہوتی ہے کہ دنیا کسے دیگسسر علقسسوں‬
‫کی طرح بادشاہوں کو مذہب میں جہاں کوئی چیز اپنے مفاد میں ملتی ہے‪ ،‬وہ اسسے‬
‫اختیار کر لیتا ہے اور جہاں کوئی چیز اس کے مفاد کے خلف نظر آتی ہے‪ ،‬اسے پسسس‬
‫پشت پھینک دیتا ہے۔‬

‫‪47‬‬

‫باب ‪ :6‬عرب میں غلمی‬
‫اہل عرب میں بھی غلمی پائی جاتی تھی۔ ان کے ہاں غلمی سے متعلق کچھ ایسسے‬
‫ادارے موجود تھے جن کی مثال دنیا کی دیگر اقوام میسسں نہیسسں ملسستی۔ چسسونکہ عسسرب‬
‫میں کوئی ایک مرکزی حکومت قائم نہ ت ھی بلکسہ السسگ السسگ قبسسائلی ریاسسستیں پسسائی‬
‫جاتی تھیں‪ ،‬اس وجہ سے غلمی کسسی عملسسی صسسورتیں مختلسسف قبسسائل میسسں مختلسسف‬
‫تھیں۔‬
‫قبل از اسلم‪ ،‬عربوں کی تاریخ سے متعلق ہمارے پاس دیگر اقسوام کسی نسسبت‬
‫بہت زیادہ مواد موجود ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ عربوں کو اپنسے نسسسب اور اپنسے آبسساؤ‬
‫اجداد کے کارناموں کو محفوظ کرنے کا جنون کی حد تک شسسوق ت ھا۔ ان کارنسساموں‬
‫کو وہ سینکڑوں اشعار پر مشتمل نظموں اور خطبات کی صورت میسسں بیسسان کرتسے‬
‫اور اپنی محفلوں میں بکثرت ان کا تذکرہ کیا کرتے تھے۔ اشعار کسسو حفسسظ کرنسے کسسا‬
‫رواج ان کے ہاں غیر معمولی درجے میں پایا جاتا تھا۔ ان ہی اشسسعار اور عربسسوں کسسی‬
‫دیگر روایات کی مدد سے عربوں کی تاریخ مدون کی گئی۔‬
‫اس ضمن میں سب سے اعلی درجے کی کاوش ڈاکٹر جواد علی کی "المفصسسل‬
‫فی تاریخ العرب قبل السلم" ہے جو آٹھ جلدوں میں شائع ہو چکی ہے۔ یہ تاریخ کسسم‬
‫و بیش چار ہزار صفحات پر محیط ہے۔ انہوں نے غلمی سے متعلق مباحث کسسو جلسسد‬
‫‪ 4‬میں تفصیل سے بیان کیا ہے۔ اس کا خلصہ کچھ یوں ہے۔‬

‫غلموں کی حیثیت‬
‫غلموں کا طبقہ عرب معاشرے میں "حقیر ترین" طبقہ تھا۔ عربوں کے زیادہ تر غلم‬
‫افریقہ سے لئے گئے تھے۔ ان کے علوہ سفید رنگت والے رومی غلم بھی ان کے ہاں‬
‫پائے جاتے تھے۔ یہ زیادہ تر عراق یا شام سے لئے جاتے تھے۔‬
‫غلموں کے لئے لفظ "عبد" استعمال کیا جاتسسا ت ھا جسسس کسسا اسسستعمال اپنسے حقیقسسی‬
‫مفہوم میں خدا کے مقابلے پر اس کے بندے کے لئے کیا جاتا تھا۔ مجازی طور پسسر آقسسا‬
‫کو اس کے غلم کا خدا تصور کیا جاتا تھا۔ مالک کے لئے مجسسازی طسسور پسسر "رب" کسسا‬
‫لفظ بھی استعمال کیا جاتا تھا۔‬
‫ان غلموں کی خرید و فروخت جانوروں یا بے جان اشیاء کی طرح کی جاتی ت ھی۔‬
‫مالک کو اپنے غلم پر مکمل حقوق حاصل تھے۔ ملکیت کسسا یسہ حسسق مقسسدس سسسمجھا‬
‫جاتا تھا۔ غلم کی کسی غلطی پر مالک اسے موت کی سزا بھی دے سکتا ت ھا۔ ابسسو‬
‫جہل نے اپنی لونڈی سمیہ رضی اللہ عنہا کو اسلم قبول کرن سے پسسر اپن سے ہاتھوں س سے‬
‫موت کی سزا دی تھی۔ زیادہ غلموں رکھن سے کسسا مقصسسد آقسساؤں کسے جسساہ و جلل اور‬
‫دولت کی نمائش ہوا کرتا تھا۔ بعض امراء کے پاس سینکڑوں کسسی تعسسداد میسسں غلم‬
‫موجود تھے۔‬

‫لون ڈیوں کی حالت‬
‫غلموں کی ایک بڑی تعداد لونڈیوں پر بھی مشتمل تھی۔ انہیں زیادہ تر گھر کے کسسام‬
‫کاج کے لئے رکھا جاتا۔ آقا کو لونڈی پر مکمل جنسی حقسسوق حاصسسل ہوا کرت سے ت ھے‬
‫‪48‬‬

‫لیکن اگر آقا کسی لونڈی کی شادی کر دے تو پھر وہ خود اپنے حق سے دستبردار ہو‬
‫جایا کرتا تھا۔ بہت سے آقا اپنی لونڈیوں سے عصمت فروشی کروایسسا کرتسے ت ھے اور‬
‫ان کی آمدنی خود وصول کیا کرتے تھے۔ ایسی لونڈیوں کو جنس مخالف کسو لب ھانے‬
‫کے لئے مکمل تربیت فراہم کی جاتی تھی۔ شب بسسسری کسے لئے کسسسی دوسسست کسسو‬
‫لونڈی عطا کر دینے کا رواج بھی ان کے ہاں پایا جاتا تھا۔‬
‫عربوں کے ہاں غلمسوں کسی باقاعسدہ تجسارت ہوا کرتسی ت ھی۔ ان کسے ہاں ایسک‬
‫باقاعدہ طبقہ موجود تھا جس کا کام ہی غلموں کی تجارت کرنا تھا۔ اس طبقے کسسو‬
‫خاس" کہا جاتا تھا۔‬
‫"ن ّ‬

‫غلموں میں اضاف ے کا طریق کار‬
‫عربوں میں لڑائی جھگڑا اور بین القبائل جنگیں عام تھیں۔ ان جنگوں میں فاتح‪ ،‬نسسہ‬
‫صرف مفتوح کے جنگی قیدیوں کو غلم بناتا بلکہ اس قبیلے کسسی خسسواتین اور بچسسوں‬
‫کو بھی غلم بنانا فاتح کا حق سمجھا جاتا تھا۔ اس حق کو کہیں پر چیلنسسج نہیسسں کیسسا‬
‫جا سکتا تھا سوائے اس کے کہ مفتوح قبیلہ دوبارہ قوت جمع کسسر ک سے اپنسسا انتقسسام ل سے‬
‫سکے۔‬
‫• قرض کی ادائیگی نہ کر سکنے کے باعث بھی لوگوں کو غلم بنا لیا جاتا تھا۔‬
‫• کسی بستی پر حملہ آور ہو کر اسے غلم بنا لینے کسسا رواج ب ھی ان ک سے ہاں‬
‫عام تھا۔ بچوں کو اغوا کر کے غلم بنا لینے کا رواج عام نہیں تھا لیکن بہرحال‬
‫پایا جاتا تھا۔‬
‫• غلموں کی اولد بھی غلم ہی ہوا کرتی تھی۔‬
‫• غلموں کو خریدنے کے علوہ جوئے میں بھی حاصل کیا جاتا تھا۔‬
‫• ایک شخص کے مرنے کے بعد اس کسے غلم وراثست میسں اسسے کسی اولد کسو‬
‫منتقل ہو جایا کرتے تھے۔‬

‫غلموں ک ے حقوق و فرائض‬
‫• غلم خطرے کی صورت میں آقاؤں کی حفاظت کا فریضسہ ب ھی سسسر انجسسام‬
‫دیا کرتے تھے۔‬
‫• اکثر مالکان غلموں کے ساتھ نہایت ہی برا سلوک کیا کرتے تھے۔ غلموں کو‬
‫مال رکھنے کی اجازت بھی نہ تھی۔ فصل کٹنسے کسے وقسست غلم کسسو اپنسسا حصسہ‬
‫بھی آقا کے حضور پیش کرنا پڑتا ت ھا۔ ی ہاں تسسک کسہ ان کسسی جنگیسسں غلم لسسڑا‬
‫کرتے تھے اور جنگ میں ملنے وال مال غنیمت آقا کی ملکیت ہوا کرتا تھا۔ یہی‬
‫وجہ ہے کہ بہت سی جنگوں میں غلم مخالف فریق سے مل کر اپنسسے مسسالکوں‬
‫سے غداری کر لیا کرتے تھے۔‬
‫• صحرائی دیہاتوں میں بھی غلم ہوا کرتے تھے۔ یہ عام طور پسسر اپن سے مسسالکوں‬
‫کے لئے گلہ بانی کیا کرتے۔ ان کی حالت شہری غلموں کی نسبت عسسام طسسور‬
‫پر بہتر ہوتی تھی کیونکہ ان کے کام کسسی نسسوعیت ش سہری غلمسسوں کسسی نسسسبت‬
‫اتنی سخت نہیں تھی۔‬

‫‪49‬‬

‫• بعض غلموں کو ان کے مالک یومیہ بنیسسادوں پسر طسے شسدہ معاوضسے پسسر آزاد‬
‫چھوڑ دیا کرتے تھے۔ یہ غلم محنت کرتے اور اپنی کمائی میں سے خراج مالک‬
‫کو ادا کر دیتے۔‬
‫• بعض غلم زرعی زمینوں سے وابستہ تھے۔ یہ کھیتوں میں کام کیا کرتے ت ھے۔‬
‫ان غلموں کو زمین کے ساتھ ہی اگلے مالک کی طرف منتقل کر دیا جاتا تھا۔‬

‫عرب میں نیم غلمی‬
‫غلموں کے علوہ کچھ نیم غلم قسم کے طبقات بھی اہل عرب ک سے ہاں پسسائے جسساتے‬
‫تھے۔ ان میں سے ایک طبقہ "الدم" یا "الدوم" پایا جاتا تھا۔ یہ مزارعین کا طبقہ ت ھا‬
‫جو خود زمین کے مالک نہ ہوا کرتے تھے بلکہ امراء کسسی جسساگیروں پسسر کسسام کرتسے اور‬
‫انہیں زمین کا کرایہ ادا کیا کرتے تھے۔ اپنے حالت کے باعث یسہ ن ہایت ہی غریسسب ہوا‬
‫کرتے تھے لیکن ان کی حالت بہرحال غلموں سے بہتر تھی کیونکہ یہ اپنسے مالسسک کسسی‬
‫ملزمسست تسسرک کسسر ک سے دوسسسری جگ سہ جسسانے کسسا اختیسسار رکھت سے ت ھے۔ ان کسسی مزیسسد‬
‫خصوصیات یہ ہیں‪:‬‬
‫• بعض اوقات جاگیردار‪ ،‬زمین کے کسی مخصوص ٹکڑے کی پیداوار کسسو اپنسسے‬
‫لئے مخصوص کر لیتے۔ ایسا عام طور پر اس زمین کے سلسلے میں کیا جاتسسا‬
‫تھا جو نہر یا برساتی نالے کے قریب واقسع ہوا کرتسی ت ھی۔ اس طریقسے سسے‬
‫اچھی زمین کی فصل جاگیردار لسے جاتسا اور خسراب زمیسن کسی ت ھوڑی سسی‬
‫پیداوار مزارعوں کے حصے میں آیا کرتی۔‬
‫• نیم غلموں میں ہاتھ سے کام کرنے والے بھی شامل ت ھے۔ زیسسادہ تسسر یسہ لسسوگ‬
‫غلم ہوا کرتے تھے لیکن ان میں سے بعض آزاد بھی ہوتے تھے۔ عرب معاشرے‬
‫میں طبقاتی تقسیم بہت شدید تھی۔ صنعتیں نہایت ہی معمسسولی درج سے کسسی‬
‫تھیں اور ہاتھ سے کام کرنے والوں کو نہایت ہی حقیر سمجھا جاتا تھا۔ یہ لسسوگ‬
‫نائی‪ ،‬موچی‪ ،‬قلی یا اس قسم کے دیگر کام کرتے۔ عرب خود ان کسساموں کسسو‬
‫پسند نہیں کیا کرتے تھے۔ اس وجہ سے یہ کام بسسالعموم غلمسسوں‪ ،‬غیسسر ملکیسسوں‬
‫اور یہودیوں کے سپرد تھے۔‬
‫• اعلی طبقے کے لوگ ہاتھ سے کام کرنے والے کی کمائی کو حقارت کی نظر‬
‫سے دیکھا کرتے تھے اور ان کے ہاں یہ بڑی شرم کی بات تھی کہ کوئی انتہائی‬
‫مجبوری کی حالت میں بھی کسی ایسے شخص سے مالی مسسدد لسے جسسو ہاتھ‬
‫سے کما کر کھاتا ہو۔‬
‫• ادنی طبقے سے تعلق رکھنے والے کسی ب ھی شسسخص سسے اعلسسی طبقسے کسسا‬
‫کوئی شخص اپنی بیٹی یا بہن کی شسسادی کرنسے کسسو تیسسار نسہ ہوتسسا ت ھا اور اس‬
‫معاملے میں پورا معاشرہ نہایت ہی حساس تھا۔ اس کا انسسدازہ اس بسسات س سے‬
‫لگایا جا سکتا ہے کہ حیرہ کے بادشاہ نعمان بن منذر کو اس بسات کسا طعنسہ دیسا‬
‫جاتا رہا کہ اس کا نانا ایک چمڑہ رنگنے وال تھا۔‬
‫• ہاتھ سے کام کرنے والوں کو حقیر سسسمجھے جسسانے کسسا بھ ہی یہہہی معسساملہ تھ ہا۔‬
‫بخسساری )حسسدیث ‪ (4020‬ک سے مطسسابق ابوج ہل کسسو مرت سے وقسست اس بسسات کسسا‬
‫افسوس رہا کہ اسے کسانوں نے قتل کیوں کیا کسسسی سسسردار ن سے قتسسل کیسسوں‬
‫نہیں کیا۔‬

‫‪50‬‬

‫ولء کا ادار ہ‬
‫غلمی کے معاملے میں عربوں کے ہاں ایک ایسا ادارہ پایا جاتا تھا جس کی مثال دنیا‬
‫کی دیگر اقوام میں نہیں ملتی۔ اگر کوئی شخص اپنے کسسی غلم کسو آزاد کرتسا تسو‬
‫اسے اپنے خاندان کا ہی ایک فرد مان لیسسا کرتسسا ت ھا۔ اس رشسستے کسسو "ولء" اور آزاد‬
‫کردہ غلم کو "مولی" جمع "موالی" کہا جاتا تھا۔ بعض اوقات آزاد کسسردہ غلم کسسو یسہ‬
‫اختیار بھی دے دیا جاتا کہ وہ اپنی ولء‪ ،‬سابق مالک کی بجسسائے کسسسی اور س سے قسسائم‬
‫کر لے۔ اس رشتے کو "ولء بالعتق" کہا جاتا تھا۔‬
‫ولء کے اس رشتے سے سابق مالک کو فائدہ یہ ہوتا کہ وہ غلم کے مرنے ک سے بعسسد‬
‫اس کا وارث بنتا اور غلم کو فائدہ یہ ہوتا کہ اس کی اگسسر کسسسی کسسو کسسوئی نقصسسان‬
‫پہنچا ہو تو اس کا جرمانہ ادا کرنا سابقہ مالک اور اس کے قسسبیلے کسسی ذم سہ داری ہوا‬
‫کرتی تھی۔‬
‫ولء کے اس تعلق کی غلمی کے علوہ ایسک شسکل اور ب ھی ت ھی۔ عربسوں میسں‬
‫اپنی عربیت اور قبیلے سے متعلق انتہا درجے کا تعصب پایا جاتا تھا۔ اگسسر کسسوئی غیسسر‬
‫ملکی یا کسی دوسرے قبیلے کا فرد ان کے درمیسسان آ کسسر رہنسسا پڑتسسا تسسو اس کسے لئے‬
‫لزم تھا کہ وہ قبیلے کے کسی فرد کے ساتھ ولء کا رشتہ قائم کرے۔ ایسے لوگوں کسسو‬
‫"موالی بالعقد" کہا جاتا تھا۔ یہ لوگ جس عرب سے ولء کا رشتہ قائم کیا کرتے تھے‪،‬‬
‫عام طور پر وہ بہت سے حقوق کے حصسول کسے لئے اس کسے محتساج ہوتے۔ اس وجسہ‬
‫سے اس قسم کے موالی بھی کسی حد تک نیم غلمی کی زنسسدگی بسسسر کیسسا کرت سے‬
‫تھے۔‬
‫مولی خواہ آزاد کردہ غلم ہو یا کسی معاہدے کے تحت مولی بنا ہو‪ ،‬اسسے حقیسسر‬
‫سمجھا جاتا تھا اور انہیں اپنی بیٹی یا بہن کا رشتہ دینا معیوب سمجھا جاتسسا ت ھا۔اگسسر‬
‫مولی کی شادی آزاد شخص کی بیٹی سے کر دی جسساتی تسسو اس کسسا قسسبیلہ خسسود کسسو‬
‫رسوا سمجھنے لگتا تھا۔ مشہور شاعروں ابسسو البجیسسر اور عبسسدالقیس نسے جسسب اپنسسی‬
‫بیٹیوں کی شادی اپنے موالی سے کی تو ان کی باقاعدہ ہجو کہی گئی۔‬

‫غلم کو آزاد کرن ے کی صورتیں‬
‫عربوں میں نیک سیرت افراد کی کمی بھی نہ تھی۔ یہ لوگ غلمسسوں کسسی حسسالت زار‬
‫پر کڑھتے اور ان سے اچھا برتاؤ کیا کرتے تھے۔ ان کے پاس غلموں کو آزاد کرنے کسسا‬
‫اس کے سوا اور کوئی طریقہ نہ تھا کہ غلموں کو خرید کر آزاد کیسسا جسسائے۔ اس کسسی‬
‫ایک مثال سیدنا حکیم بن حزام رضی اللہ عنہ ہیں جنہوں ن سے دور جسساہلیت میسسں ایسسک‬
‫سو غلموں کو خرید کر آزاد کیا۔‬
‫غلموں کی آزادی کی ایک شکل یہ بھی تھی کہ وہ اپنی آزادی خود خرید سکیں۔‬
‫ایسا کرنے کے لئے ان کے مالک کی اجازت ضروری تھی۔ اگر مالک اس بات پر تیسسار‬
‫ہو جاتا تو غلم اپنی آزادی کو خرید کر قسطوں میسسں ادائیگسسی کسسر سسسکتا تھہہا۔ ابسسن‬
‫سعد بیان کرتے ہیں کہ یہ رواج عرب میں بہت ہی کم تھا۔‬
‫غلموں کی آزادی کی ایک صورت یسہ ب ھی ت ھی کسہ مالسسک اپنسے کسسی غلم کسسو‬
‫وصیت کر دیتا کہ میرے مرنے کے بعد تسسم آزاد ہو۔ ایس سے غلم کسسو پ ھر وراثسست میسسں‬
‫تقسیم نہ کیا جاتا بلکہ مالک کے مرنے کے ساتھ ہی وہ آزاد ہو جایا کرتا تھا۔‬
‫"ام ولد" کا تصور بھی اسلم سے پہلسے کسے عربسوں میسں پایسا جاتسا ت ھا۔ ام ولسد‬
‫ایسی لونڈی کو کہا جاتا تھا جو اپنے مالک سے بچہ پیدا کرے۔ ایسی لونڈی کسی خریسسد‬
‫‪51‬‬

‫و فروخت بھی کی جاتی تھی۔ اگر مالک اس لونڈی کو فروخت نہ کرتا تو مالک کسسے‬
‫مرنے کے بعد وہ خود بخود آزاد ہو جایا کرتی تھی۔‬

‫خلص ہ بحث‬
‫اسلم سے قبل کے دور میں غلمی کی اس صورتحال کے جائزے سے ی سہ نتسسائج نکسسل‬
‫سکتے ہیں‪:‬‬
‫• ظہور اسلم کے وقت دنیا میں غلموں کی ایک بہت بڑی تعداد موجود ت ھی۔‬
‫یہ غلم عرب‪ ،‬روم‪ ،‬افریقہ‪ ،‬ایران‪ ،‬ہندوستان‪ ،‬وسط ایشیا‪ ،‬چیسن میسں موجسود‬
‫تھے۔‬
‫• بعض ممالک میں غلمسسی اپنسسی بسسدترین شسسکل میسسں موجسسود ت ھی اور بعسسض‬
‫ممالک میں غلموں کے حالت نسبتا ً بہتر تھے۔ عرب اور روم کے غلموں کسسی‬
‫حالت پوری دنیا میں سب سے بدتر تھی۔‬
‫• دنیا کے عام مذاہب اگرچہ غلمی کو مکمل طور پر ختم تو نہ کر سکے لیکسن‬
‫انہوں نے بالعموم غلموں کی حالت کو بہتر بنانے کی تلقین کسسی۔ ج ہاں ج ہاں‬
‫مذہبی تعلیمات کے تحت حکومتیں قائم ہوئیں‪ ،‬وہاں عملی اقدامات بھی کی سے‬
‫گئے۔‬
‫• سیدنا موسی علیہ الصلوۃ والسلم کسی شسسریعت میسں‪ ،‬انسسسانی کسی معلسوم‬
‫تاریخ میں پہلی مرتبہ‪ ،‬غلمی کے خاتمے ک سے لئے قسسوانین بنسسائے گئے اور ان پسسر‬
‫بڑی حد تک عمل بھی کیا گیا۔ بعد کے ادوار میں ہونے والی بعض تبدیلیوں کے‬
‫باعث ان قوانین کے اثر کو محدود کر دیا گیا۔‬

‫‪52‬‬

‫حص ہ سوم‪ :‬اسلم اور‬
‫غلمی‬

‫‪53‬‬

‫باب ‪ :7‬اسلم میں غلموں‬
‫کی آزادی کی تحریک‬
‫اسلم اور غلمی کی بحث سے قبل چند امور ذہن نشین کر لینے چاہییں۔ پہلی بسسات‬
‫تو یہ کہ اسلم نے غلمی کا آغاز نہیں کیا۔ جیسا کہ پچھلے باب میں تفصیل سے بیسسان‬
‫کیا جا چکا ہے کہ اسلم سے پہلے غلمی موجود تھی۔ اس غلمی کی ایک پیچیسسدہ اور‬
‫خوفناک شکل جزیرہ نما عرب اور اس کے گرد و نواح کے ممالک میں موجود ت ھی۔‬
‫پوری دنیا اس وقت غلمی کو برقرار رکھنے کے حق میں تھی اور غلمی ک سے خلف‬
‫کہیں کوئی آواز موجود نہ تھی۔ اللہ تعالی کے رسول صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫اس غلمی کے ساتھ کیا معاملہ کیا‪ ،‬اسے جاننے کے لئے عرب اور دیگسسر ممالسسک میسسں‬
‫موجود غلمی کی صورتحال کو مدنظر رکھنا ضروری ہے۔‬
‫دوسری بات یہ ہے کہ جس طرح بنی اسرائیل کے ہاں غلمسسی کسسا مطسسالعہ کرت سے‬
‫وقت ہم نسے ان کسے آئیسڈیل اور دیگسسر ادوار میسسں فسسرق کیسسا ت ھا‪ ،‬بالکسسل اسسسی طسسرح‬
‫مسلمانوں کی تاریخ میں غلمی کا مطالعہ کرتے ہوئے ہمیں آئیڈیل اور بعد کسسے ادوار‬
‫میں فرق کرنا چاہیے۔ اسلم کا آئیڈیل دور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ک سے‬
‫مدینہ ہجرت کرنے سے شروع ہو کر خلفت راشدہ کے خاتمے تک رہا ہے۔ اس کے بعسد‬
‫اگر سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے دور کو بھی اسی میں شامل کر لیا جائے تو‬
‫اسلم کے آئیڈیل دور کی مدت ساٹھ سال )‪ (60H / 622 – 680CE – 1‬کے قریب بنتی‬
‫ہے۔ اسلمی حکومت قائم ہونے سے پہلے اگر رسول اللہ صسسلی اللسہ علی سہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫کی مکی زندگی کے تیرہ سالوں کو بھی اسی میں شمار کر لیا جائے تو یہ مدت کسم‬
‫و بیش ‪ 73‬سال بنتی ہے۔‬
‫آئیڈیل دور کے بعد کے ادوار میں بھی اگرچسہ شسسریعت اسسسلمی ہی حکسسومت کسسا‬
‫آفیشل قانون رہی ہے لیکن اس سے انحراف کی مثالیں بھی موجسود ہیسں۔ اس کسی‬
‫بنیادی وجہ یہ تھی کہ ایک حدیث کے الفاظ کے مطابق خلفت راشدہ کو "کاٹ ک ھانے‬
‫والی بادشاہت" اور پھر "جبر کی بادشاہت" میں تبدیل کر دیا گیا ت ھا۔ انحسسراف کسے‬
‫اس دور میں غلمی کے ادارے کی تفصیلت ہم متعلقہ باب میں بیان کریں گے۔‬
‫تیسرا اہم نکتہ یہ ہے کہ لوگ عسسام طسسور پسسر مسسسلمانوں کسسی فقسہ کسسی کتسسب سسے‬
‫قوانین دیکھ کر ان کی بنیاد پر اسلم پر اعتراضسسات کرنسا شسسروع کسسر دیتسے ہیسسں۔ یسہ‬
‫طریق کار بالکل غلط ہے۔ علم فقہ‪ ،‬مسلم فقہاء کسی قسانون سسازی کسا ریکسارڈ ہے۔‬
‫اس ریکارڈ میں ایسے قوانین بھی موجود ہیں جو خالصتا ً قرآن مجید اور رسول اللہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کی بنیاد پر ہیں۔ ان کے علوہ انہی کتب فقہ میسسں‬
‫ایسے قوانین بھی موجود ہیں جن کی بنیاد فقہاء کے اپنے اجتہادات ہیں۔ ظاہر ہے ک سہ‬
‫ان اجتہادی قوانین کے لئے دین اسلم کو ذمہ دار نہیں ٹھہرایا جا سکتا۔‬
‫دین اسلم صرف اور صرف انہی قوانین کے لئے ذمہ دار ہے جسسو اس ک سے اصسسل‬
‫ماخذ یعنی قرآن مجید اور پیغمبر اسلم صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم کسی سسسنت میسسں‬
‫بیان کئے گئے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ اس باب میں ہم صرف انہی احکامات کا جائزہ لیں‬
‫گے جو قرآن مجید اور احادیث میں بیان کئے گئے ہیں۔‬

‫‪54‬‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کسی بعثسست کسسم و بیسسش ‪ 609CE‬میسسں ہوئی۔‬
‫اس دور میں عرب بہت سی چھوٹی بڑی قبائلی ریاستوں کا مجموعہ تھا۔ جزیرہ نما‬
‫عرب کے اردگرد ایران کی ساسانی اور روم کی بازنطینی سلطنتوں کسسی حکسسومت‬
‫قائم تھی۔ عرب میں یمن کا علقہ ایران کے اور شام کا علقہ روم کے مسساتحت ت ھا۔‬
‫ان تمام سلطنتوں میں غلمی کی صورتحال کم و بیش وہی تھی جس سے ہم پچھلسے‬
‫باب میں بیان کر چکے ہیں۔‬
‫دین اسلم کی تعلیمات میں غلمی کو ایک جھٹکے میں ختم نہ کیا گیسسا بلک سہ اس‬
‫سے متعلق کچھ اہم ترین اصلحات نافذ کی گئیں۔ ان اصطلحات کا ایک حصہ تو ان‬
‫غلموں سے متعلق ہے جو معاشرے میں پہلے سے ہی موجسسود ت ھے اور دوسسسرا حص سہ‬
‫آئندہ بنائے جانے والے غلموں سے متعلق ہے۔‬
‫جیسا کہ ہم پچھلے باب میں بیان کر چکے ہیں کہ رسول اللہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم کی بعثت کے وقت عرب میں کثیر تعداد میں غلم موجسسود ت ھے۔ غلمسسوں کسسا‬
‫طبقہ عرب معاشرے میں "حقیر ترین" طبقہ تھا۔ ان غلمسسوں کسسی خریسسد و فروخسست‬
‫جانوروں یا بے جان اشیاء کی طرح کی جاتی تھی۔ مالسسک کسسو اپن سے غلم پسسر مکمسسل‬
‫حقوق حاصل تھے۔ ملکیت کا یہ حق مقدس سمجھا جاتا تھا۔ غلم کی کسی غلطسسی‬
‫پر مالک اسے موت کی سزا بھی دے سکتا تھا۔ مجازی طور پر آقا کو اس کسسے غلم‬
‫کا خدا تصور کیا جاتا تھا۔ غلموں کی اولد بھی غلم ہی ہوا کرتی تھی۔ ایک شخص‬
‫کے مرنے کے بعد اس کے غلم وراثت میں اسے کسی اولد کسو منتقسل ہو جایسا کرتسے‬
‫تھے۔‬
‫زیادہ غلموں رکھنے کا مقصد آقاؤں کے جسساہ و جلل اور دولسست کسسی نمسسائش ہوا‬
‫کرتا تھا۔ بعض امراء ک سے پسساس سسسینکڑوں کسسی تعسسداد میسسں غلم موجسسود ت ھے۔ غلم‬
‫خطرے کی صورت میں آقاؤں کی حفاظت کا فریضہ بھی سر انجام دیا کرت سے ت ھے۔‬
‫اکثر مالکان غلموں کے ساتھ نہایت ہی برا سلوک کیا کرتسے ت ھے۔ غلمسسوں کسسو مسسال‬
‫رکھنے کی اجازت بھی نہ تھی۔ غلم کو جنسسگ میسسں ملن سے وال مسسال غنیمسست آقسسا کسسی‬
‫ملکیت ہوا کرتا تھا۔‬
‫غلموں کی ایک بڑی تعداد لونڈیوں پر بھی مشتمل تھی۔ انہیں زیادہ تر گھر کسسے‬
‫کام کاج کے لئے رکھا جاتا۔ آقا کو لونڈی پر مکمل جنسسسی حقسسوق حاصسسل ہوا کرتسے‬
‫تھے لیکن اگر آقا کسسسی لون سڈی کسسی شسسادی کسسر دے تسسو پ ھر وہ خسسود اپن سے حسسق سسے‬
‫دستبردار ہو جایا کرتا تھا۔ بہت سے آقا ان لونڈیوں سے عصمت فروشی کا کسسام ل سے‬
‫کر ان کی کمائی خود وصول کیا کرتے تھے۔ ایسسسی لونسڈیوں کسسو جنسسس مخسسالف کسسو‬
‫لبھانے کے لئے مکمل تربیت فراہم کی جاتی تھی۔ شب بسری کے لئے کسی دوست‬
‫کو ایک رات کے لئے لونڈی دے دینے کا رواج بھی ان کے ہاں پایا جاتا تھا۔‬
‫غلموں کے علوہ کچھ نیم غلم قسم کے طبقات ب ھی ا ہل عسسرب ک سے ہاں پسسائے‬
‫جاتے تھے۔ ان میں سے ایک مزارعین کا طبقہ تھا جو خود زمین کے مالک نہ ہوا کرتے‬
‫تھے بلکہ امراء کی جاگیروں پر کام کرتے اور انہیں زمین کا کرایہ ادا کیا کرت سے ت ھے۔‬
‫بعض اوقات جاگیردار‪ ،‬زمین کے کسسسی مخصسسوص ٹکسسڑے کسسی پیسسداوار کسسو اپن سے لئے‬
‫مخصوص کر لیتے۔ ایسا عام طور پر اس زمین کے سلسلے میں کیا جاتا تھا جو ن ہر‬
‫یا برساتی نالے کے قریب واقع ہوا کرتی ت ھی۔ اس طریق سے س سے اچ ھی زمیسسن کسسی‬
‫فصل جاگیردار لے جاتا اور خراب زمین کی تھوڑی سی پیداوار مزارعوں کے حص سے‬
‫میں آیا کرتی۔‬
‫عرب معاشرے میں طبقاتی تقسیم بہت شدید تھی۔ صنعتیں نہایت ہی معمسسولی‬
‫درجے کی تھیں اور ہاتھ سے کام کرنے والوں کو نہایت ہی حقیر سمجھا جاتا ت ھا۔ یسسہ‬
‫‪55‬‬

‫لوگ نائی‪ ،‬موچی‪ ،‬قلی یا اس قسم کسے دیگسر کسام کرتسے۔ ادنسی طبقسے سسے تعلسق‬
‫رکھنے والے کسی بھی شخص سے اعلی طبقے کا کوئی شخص اپنی بیٹی یا بہن کی‬
‫شادی کرنے کو تیار نہ ہوتا تھا اور اس معاملے میں پورا معاشرہ ن ہایت ہی حسسساس‬
‫تھا۔‬
‫ان حالت میں اسلم کا ظ ہور ہوا۔ اللسہ تعسسالی نسے ج ہاں مسسسلمانوں کسسو دیگسسر‬
‫معاملت میں بہت سے احکامات دیے‪ ،‬وہاں غلمی سے متعلق ب ھی احکامسسات نسسازل‬
‫ہوئے۔ قرآن مجید اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی تعلیمات میں غلمسسوں‬
‫کو آزاد کرنے کی تحریک پیدا کرنے سے متعلق احکامات کو ان عنوانات میں تقسیم‬
‫کیا جا سکتا ہے‪:‬‬
‫• غلموں کو آزاد کرنے کی ترغیب‬
‫• غلموں کی آزادی کی مثال قائم کرنا‬
‫• مکاتبت کے ادارے کا قیام‬
‫• حکومتی سطح پر غلموں کی آزادی کے اقدامات‬
‫• مذہبی بنیادوں پر غلم آزاد کرنے کے احکامات‬
‫• قریبی رشتے دار غلم کی آزادی کا قانون‬
‫• اسلم قبول کرنے والے غلموں کی آزادی کا قانون‬
‫اب ہم ان کی تفصیل بیان کرتے ہیں‪:‬‬

‫غلموں کو آزاد کرن ے کی ترغیب‬
‫غلمی ک ے خاتم ے کا وژن‬
‫اللہ تعالی نے وحی کے آغاز ہی میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم ک سے ذریع سے‬
‫مسلمانوں کو غلمی کے خاتمے کے لئے ایک وژن دے دیا تھا۔‬
‫ضك ُ ْ َ‬
‫ض َ‬
‫مسسا‬
‫ما ال ّ ِ‬
‫ن فُ ّ‬
‫ل ب َعْ َ‬
‫ه فَ ّ‬
‫م ع َل َسسى َ‬
‫ض سُلوا ب ِسَراّدي رِْزقِهِ س ْ‬
‫ق فَ َ‬
‫َوالل ّ ُ‬
‫ذي َ‬
‫ض َِفي الّرْز ِ‬
‫م ع َلى ب َعْ ٍ‬
‫َ‬
‫ن ۔ )النحل ‪(16:71‬‬
‫دو َ‬
‫ح ُ‬
‫ج َ‬
‫مةِ الل ّهِ ي َ ْ‬
‫م ِفيهِ َ‬
‫واٌء أفَب ِن ِعْ َ‬
‫م فَهُ ْ‬
‫مان ُهُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َ ْ‬
‫َ‬
‫س َ‬
‫اللہ نے تم میں سے بعض کو دیگر پر رزق کے معاملے میں بہتر بنایا ہے۔ تو ایسسسا کیسسوں نہیسسں‬
‫ہے کہ جو رزق کے معاملے میں فوقیت رکھتے ہیں وہ اسے غلموں کو منتقل کسسر دیسسں تسساکہ وہ‬
‫ان کے برابر آ سکیں۔ تو کیا اللہ کا احسان ماننے سے ان لوگوں کو انکار ہے؟‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو آغاز وحی س سے ہی غلمسسوں کسسی آزادی کسسی‬
‫ترغیب دی جانے لگی۔ آپ ارشاد فرمایا کرتے تھے کہ انہیں دوران وحی غلمسسوں کسسو‬
‫آزاد کرنے کا خاص حکم دیا جاتا ہے‪:‬‬
‫ن‬
‫ب ل ََنا ث ِ َ‬
‫قس ٌ‬
‫صا ِ‬
‫ن ِ‬
‫ح ٌ‬
‫ل‪َ ،‬‬
‫ن ع َّبادٍ ‪َ ،‬‬
‫َ‬
‫ن َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫ة ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫هل ٍ‬
‫حد ّث ََنا ع َب ْد ُ الل ّهِ ب ْ ُ‬
‫حد ّث ََنا ع َّباد ُ ب ْ ُ‬
‫سسِعيد ِ ب ْس ِ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫سو ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ل الل ّهِ صلى الله عليه وسلم ‪:‬‬
‫ر‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫ه‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ال‬
‫ي‬
‫ض‬
‫ر‬
‫س‬
‫با‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ا‬
‫ن‬
‫ع‬
‫‪،‬‬
‫ر‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ج‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ ُ‬
‫ُ ْ ُ‬
‫ِ ْ ِ ّ ٍ َ ِ َ‬
‫ُ َْ ٍ‬
‫السلم يوصيِني بال ْممُلوك ‪ ،‬حتى ظ َننت أ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫دا إ َِذا‬
‫س‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ج‬
‫ي‬
‫س‬
‫س‬
‫ه‬
‫س‬
‫ن‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ري‬
‫ب‬
‫ج‬
‫ل‬
‫زا‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫حس ّ‬
‫ه َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ما َ‬
‫ّ ُ‬
‫ُ َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ِ َ ْ‬
‫َ‬
‫ِ ِ‬
‫قوا‪ .‬وحديث المملوك صحيح على شسرطه وشسسرط البخسساري )بيهقسسي‪ ،‬شسسعب‬
‫ب َل َُغوا ع َت ِ ُ‬
‫اليمان‪ ،‬عسقلنی‪ ،‬المطالب العالية‪ ،‬باب ابن عباس(‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے‬
‫ارشاد فرمایا‪" ،‬جبریل مجھے مسلسل غلموں کے بارے میں نصیحت کرتے رہے ی ہاں تسسک ک سہ‬
‫مجھے یہ خیال گزرا کہ وہ )اللہ تعالی کی جانب سے( کوئی ایسی حد مقرر فرما دیں گسسے کسسہ‬
‫‪56‬‬

‫جس پر پہنچ کر غلم کو آزاد کر دیا جائے۔" بیہقی کہتے ہیں کہ یہ حدیث بخاری و مسسسلم کسسی‬
‫شرائط کے مطابق صحیح ہے۔‬

‫جیسا کہ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کا خیال تھا‪ ،‬یسہ حسسد بعسسد میسسں مکسساتبت کسے‬
‫قانون میں مقرر کر دی گئی۔ اس کی تفصیل ہم آگے چل کر بیان کریں گے۔ غلمی‬
‫کے بارے میسسں اسسسلم کسسا یسہ وژن اتنسسا واضسسح ہے کسہ اس کسا اعسستراف انصسساف پسسسند‬
‫مستشرقین بھی کرتے ہیں‪:‬‬
‫‪For, far from being passive submission to Allah’s inscrutable will, Islam gives each‬‬
‫‪individual the chance to contribute actively towards his own salvation. For instance, in the‬‬
‫‪Koran slavery was taken for granted, in accordance with prevailing practice; but freeing‬‬
‫‪of slaves was encouraged as meritorious. Thus, the Koran, in the seventh century A.D.,‬‬
‫‪does not consider slavery an immutable, God-given state for certain groups of human‬‬
‫‪beings, but an unfortunate accident. It was within the reach of man to ameliorate this‬‬
‫)‪misfortune. (Ilse Lichtenstadter; Islam & the Modern World‬‬
‫اسلم محض اللہ کی رضا کے سامنے سر جھکا دینے کا نام نہیں ہے۔ اسلم ہر شسسخص کسسو یسہ‬
‫حق دیتا ہے کہ وہ اپنی نجات کے لئے خود متحرک ہو کر کام کرے۔ مثال کے طور پر قسسرآن یسسہ‬
‫بیان کرتا ہے کہ غلمی دنیا میں متواتر عمل کے طور پر موجود ہے لیکن غلم آزاد کرن سے کسسو‬
‫ایک بڑی نیکی قرار دے کر اس کی حوصلہ افزائی کی گئی ہے۔ ساتویں صدی کے قسسرآن نسے‬
‫غلمی کو ناقابل تبدیلی قرار نہیں دیا کہ یہ ایک ایسی حسسالت ہے جسسو خسسدا ن سے چنسسد انسسسانی‬
‫گروہوں پر مسلط کر دی ہے‪ ،‬بلکہ )قرآن کے نزدیک( یہ ایک منحوس حادثہ ہے جسسس کسسا ازالسہ‬
‫کرنا انسان کے اختیار میں ہے۔‬

‫ابتدائی مسلمان اور غلمی‬
‫جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اسلم کی دعسوت پیسش کسی تسو حیسرت‬
‫انگیز طور پر اس دعوت نے دو طبقات کو متاثر کیا۔ ان میں سسے ایسسک طبقسہ تسسو وہ‬
‫تھا جو مکہ کی اشرافیہ سے تعلق رکھتسسا ت ھا لیکسسن وہ موجسسودہ مسسذہبی‪ ،‬سیاسسسی اور‬
‫معاشرتی نظام سے مطمئن نہ تھا۔ اس طبقے کسے اسسسلم کسسی دعسسوت قبسسول کرنسے‬
‫والے افراد کی مثال سیدنا ابوبکر‪ ،‬عثمان‪ ،‬طلحہ‪ ،‬زبیر‪ ،‬سعد بن ابی وقسساص‪ ،‬سسسعید‬
‫بن زید‪ ،‬ابو عبیدہ‪ ،‬خدیجہ رضی اللہ عنہم ہیں۔ دوسرا طبقہ غلمسسوں اور نیسسم غلمسسوں‬
‫پر مشتمل تھا جس میں سیدنا بلل‪ ،‬یاسر‪ ،‬سمیہ‪ ،‬عمار‪ ،‬صہیب اور خباب رضی اللہ‬
‫عنہم شامل تھے۔‬
‫یہ مذہبی جبر )‪ (Religious Persecution‬کا دور تھا۔ جہاں ایک طرف اشرافیہ کسسے‬
‫طبقے سے تعلق رکھنے والے مسلمانوں کو اپنے بزرگوں کسے ہاتھوں جسسبر کسسا سسسامنا‬
‫کرنا پڑا وہاں غلم طبقے کو تو باقاعدہ جسمانی تشدد کا نشسسانہ بنایسسا جسسانے لگسسا۔ ان‬
‫غلموں کو مکہ کی تپتی ریت اور دہکتی چٹانوں پر لٹا کر بھاری بھرکم پت ھر ان کسے‬
‫سینے پر رکھ دیے جاتے۔ اس موقع پر اسلم قبول کرنے والے امیر افسسراد سسسامنے آئے‬
‫اور انہوں نے ان غلموں کو خرید کر آزاد کرنے کا عمل شروع کیا۔‬
‫اگر ہم اس دور میں نازل شدہ قرآنی آیات کا مطالعہ کریں تو یہ معلوم ہو گا ک سہ‬
‫قرآن اپنے ماننے والوں کو اللہ تعالی کی عطا کسسردہ نعمسستیں یسساد دل کسسر غلمسسوں کسسو‬
‫آزاد کرنے کی ترغیب دیتا ہے۔ ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫مسسا أ َد َْرا َ‬
‫جع َ ْ‬
‫سانا ً وَ َ‬
‫ك‬
‫م ال ْعَ َ‬
‫ش َ‬
‫قب َس َ‬
‫ن۔ َفل اقْت َ َ‬
‫ن‪ .‬وَهَد َي َْناه ُ الن ّ ْ‬
‫م نَ ْ‬
‫ن‪ .‬وَل ِ َ‬
‫ة۔ و َ َ‬
‫حس َ‬
‫ل لَ ُ‬
‫أل َ ْ‬
‫جد َي ْ ِ‬
‫فت َي ْ ِ‬
‫ه ع َي ْن َي ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ة۔ فَ ّ‬
‫م ْ‬
‫ما ال ْعَ َ‬
‫قب َ ُ‬
‫مت َْرب َةٍ‬
‫س ِ‬
‫ة۔ أوْ ِ‬
‫قَرب َ ٍ‬
‫سغَب َ ٍ‬
‫ك َرقَب َ ٍ‬
‫ة۔ أوْ إ ِط َْعا ٌ‬
‫م ْ‬
‫م ْ‬
‫كينا ً َذا َ‬
‫ة۔ ي َِتيما ً َذا َ‬
‫م ِفي ي َوْم ٍ ِذي َ‬
‫َ‬
‫۔ )‪(15-90:11‬‬
‫کیا ہم نے اس )انسان( کے لئے دو آنکھیں‪ ،‬زبان اور دو ہونٹ نہیسسں بنسسائے اور دونسسوں نمایسساں‬
‫راستے اسے نہیں دکھائے۔ مگر اس نے دشوار گزار گھاٹی سے گزرنے کی کوشش نہیسسں کسسی‬
‫‪57‬‬

‫اور تمہیں کیا معلوم کہ وہ دشوار گسسزار گ ھاٹی ہے کیسسا؟ کسسسی گسسردن کسسو غلمسسی سسے آزاد‬
‫کروانا‪ ،‬یا فاقے میں مبتل کسی قریبی یتیم یا مسکین کو کھانا کھلنا۔‬

‫ان قرآنی تعلیمات کے نتائج خاطر خواہ نکلے اور اسلم کے آغاز ہی سے یہ بات طسسے‬
‫ہو گئی کہ غلم بھی آزاد ہی کی طرح کے انسان ہیں اور آزاد افراد کا یہ فرض ہے کہ‬
‫وہ ان غلموں کو برابری کی سطح پر لئیں۔ اس صسسورتحال پسسر تبصسسرہ کرت سے ہوئے‬
‫امریکی مستشرق ٹاؤن سینڈ لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪Numerous slaves also announced their adhesion to the new opinions. Abu Bekr exhausted‬‬
‫‪great wealth for an Arab in purchasing slaves who had been persecuted for their admira‬‬
‫‪tion of Mahommed, and from that day to this Islam has been distinguished by its‬‬
‫‪adherence to one high principle. The slave who embraces Islam is free ; not simply a freed‬‬
‫‪man, but a free citizen, the equal of all save the Sultan, competent de facto as well as de‬‬
‫)‪jure to all and every office in the state. (Townsend, Asia vs. Europe‬‬
‫ان نئے عقائد کو قبول کرنے والوں میں بہت سے غلم بھی تھے۔ ابوبکر نے اپنسسی دولسست‪ ،‬جسسو‬
‫کہ کسی عرب کے لئے بڑی دولت تھی‪ ،‬کو ان غلموں کو خرید کر )آزاد کرنے میسسں( صسسرف‬
‫کیا جو کہ محمد )صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم( پر ایمسسان ل چکسے ت ھے۔ اس دن کسے بعسسد آج تسسک‬
‫اسلم میں ایک اصول تو طے شدہ ہے۔ ہر وہ غلم جو اسلم قبول کر لے‪ ،‬آزاد ہو جاتا ہے۔ نسہ‬
‫صرف ایک آزاد انسان‪ ،‬بلکہ ایک آزاد شہری جو کہ بادشاہ کے علوہ دوسرے تمام شہریوں کے‬
‫برابر اور قانونی اور حقیقی اعتبار سے ہر عہدے کے لئے موزوں سمجھا جاتا ہے۔‬

‫ٹاؤن سینڈ کو یہ غلطی لحق ہوئی ہے کہ غلم کا درجہ بادشاہ سے کم ہے۔ اسلم میں‬
‫عزت اور مرتبے کا معیار صرف اور صرف تقوی ہے۔ ایک غلم اگر متقی ہے تسسو اس‬
‫کا درجہ ایک صحیح اسلمی معاشرے میں کسی بدکار بادشسساہ س سے کہیسسں زیسسادہ ہے۔‬
‫ہجرت کے بعد میں مزید ایسی آیات نازل ہوئیں جنہوں نے غلم آزاد کرن سے کسسو بسسڑی‬
‫نیکی قرار دیا۔‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫م قِب َ َ‬
‫م ْ‬
‫ن ت ُوَّلوا وُ ُ‬
‫س ال ْب ِّر أ ْ‬
‫نآ َ‬
‫ن ال ْب ِّر َ‬
‫ق َوال ْ َ‬
‫ل ال ْ َ‬
‫جوهَك ُ ْ‬
‫مغْرِ ِ‬
‫ل َي ْ َ‬
‫م َ‬
‫م ْ‬
‫ب وَل َك ِ ّ‬
‫شر ِ ِ‬
‫ن ِباللهِ َوالَيسسوْم ِ‬
‫مسسا َ‬
‫مى‬
‫حب ّسهِ ذ َِوي ال ْ ُ‬
‫ال ِ‬
‫ل ع َل َسسى ُ‬
‫قْرب َسسى َوال ْي َت َسسا َ‬
‫ن َوآت َسسى ال ْ َ‬
‫خ سرِ َوال ْ َ‬
‫ملئ ِك َسةِ َوال ْك ِت َسسا ِ‬
‫ب َوالن ّب ِّيي س َ‬
‫َ‬
‫ب۔ )‪(2:177‬‬
‫قا‬
‫ر‬
‫ال‬
‫في‬
‫و‬
‫ن‬
‫لي‬
‫ئ‬
‫سا‬
‫وال‬
‫ل‬
‫بي‬
‫س‬
‫ال‬
‫ن‬
‫ب‬
‫وا‬
‫ن‬
‫كي‬
‫سا‬
‫م‬
‫ّ ِ ِ َ ّ ِِ َ َ ِ‬
‫ِ‬
‫ّ‬
‫َوال ْ َ َ ِ َ َ ْ َ‬
‫نیکی یہ نہیں کہ تم اپنے چہروں کو مشرق یا مغرب کی طرف کر لو بلکہ نیکسی تسسو یسہ ہے کسہ‬
‫کوئی اللہ‪ ،‬یوم آخرت‪ ،‬فرشتوں‪ ،‬آسمانی کتب‪ ،‬اور نبیوں پر ایمان لئے اور اپنے مال کو الل سہ‬
‫کی محبت میں رشتے داروں‪ ،‬یتیموں‪ ،‬مسکینوں‪ ،‬مسافروں‪ ،‬سسسائلوں اور غلمسسوں کسسو آزاد‬
‫کرنے کے لئے خرچ کرے۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے اپنسسی تعلیمسسات میسسں غلم آزاد کرنسے کسسی‬
‫فضیلت بیان کرتے ہوئے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫حدثنا أحمد بن يونس‪ :‬حدثنا عاصم بسن محمسد قسال‪ :‬حسدثني واقسد ابسن محمسد قسال‪:‬‬
‫حدثني سعيد بن مرجانة‪ ،‬صاحب علي بن حسين‪ ،‬قال‪ :‬قال لي أبو هريرة رضي الله‬
‫عنه‪ :‬قال النبي صلى الله عليه وسلم‪" :‬أيما رجل أعتق امسسرأ مسسسلما‪ ،‬اسسستنقذ اللسسه‬
‫بكل عضو منه عضوا منه من النار۔" قال سعيد بن مرجانة‪ :‬فانطلقت به إلى علي بن‬
‫حسين‪ ،‬فعمد علي بن حسين رضي لله عنهما إلى عبد له‪ ،‬قد أعطاه به عبد الله بسسن‬
‫جعفر عشرة آلف درهم‪ ،‬أو ألف دينار‪ ،‬فأعتقه‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2517‬‬
‫ابوھریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے فرمایسسا‪" :‬جسسو شسسخص‬
‫بھی کسی مسلمان غلم کو آزاد کرتا ہے‪ ،‬اللہ تعالی اس )غلم( کسے ہر ہر عضسسو کسے بسسدلے‬
‫)آزاد کرنے والے کے( ہر ہر عضو کو جہنم سے آزاد کرے گا۔" سعید بسسن مرجسسانہ کہت سے ہیسسں کسہ‬
‫اس کے بعد میں علی بن حسین )زین العابدین( رضی اللہ عنہما کے پاس گیا اور ان س سے ی سہ‬
‫حدیث بیان کی تو انہوں نے اپنے ایک غلم کی طرف رخ کیا اور اسے آزاد کر دیسسا۔ اس غلم‬
‫کی قیمت عبداللہ بن جعفر دس ہزار درہم یا ایک ہزار دینار لگا چکے تھے۔‬

‫‪58‬‬

‫اسلم میں آزادی کی اس تحریک کو صرف انسانوں تک ہی محسدود نہیسں رک ھا گیسا‬
‫بلکہ کسی بھی "نسمہ" )یعنی جاندار چیز جس میں انسان‪ ،‬جانور اور پرندے سسسبھی‬
‫شامل ہیں( کی آزادی کو ایک نیکی قرار دے دیا گیا۔‬
‫وعن ابن عباس قال‪ :‬جاء رجل إلى النبي صلى الله عليه وسلم فقال‪ :‬يا رسول الله‬
‫أصبت امرأتي وهي حائض فأمره رسول الله صلى الله عليه وسسسلم أن يعتسسق نسسمة‬
‫وقيمة النسمة يومئذ دينار‪) .‬مجمع الزوائد‪ ،‬کتاب الطهارة(‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ ایک شخص نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‬
‫کے پاس آیا اور کہنے لگا‪" ،‬یا رسول اللہ! میں نے حالت حیض میں اپنی بیوی س سے ازدواجسسی‬
‫تعلقات قائم کر لئے ہیں۔" رسول اللہ صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے اسسے ایسسک جانسسدار آزاد‬
‫کرنے کا حکم دیا۔ آج کے دن جاندار چیز کی )کم سے کم قیمت( ایک دینار ہے۔‬

‫غیر مسلم غلموں کی آزادی‬
‫ان آیات و حدیث سے کوئی یہ سمجھ سکتا ہے کہ صرف مسسسلمان غلم ہی کسسو آزاد‬
‫کرنا باعث اجر ہے لیکن حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سسسیدنا حکیسسم بسسن حسسزام‬
‫رضی اللہ عنہ کو‪ ،‬جنہوں نے بہت سے غیر مسلم غلموں کو آزاد کیا تھا‪ ،‬کو بھی اجر‬
‫ملنے کی بشارت دی۔‬
‫حدثنا عبيد بن إسماعيل‪ :‬حدثنا أبو أسامة‪ ،‬عن هشسسام‪ :‬أخسسبرني أبسسي‪ :‬أن حكيسسم بسسن‬
‫حزام رضي الله عنه أعتق في الجاهلية مائة رقبة‪ ،‬وحمل على مائة بعير‪ ،‬فلما أسلم‬
‫حمل على مائة بعير‪ ،‬وأعتق مائة رقبة‪ ،‬قال‪ :‬فسسسألت رسسسول اللسسه صسسلى اللسسه عليسسه‬
‫وسلم فقلت‪ :‬يا رسول الله‪ ،‬أرأيت أشياء كنسست أصسسنعها فسسي الجاهليسسة‪ ،‬كنسست أتحنسسث‬
‫بها؟ يعني أتبرر بها‪ ،‬قال‪ :‬فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم‪) :‬أسلمت علسسى مسسا‬
‫سلف لك من خير(‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2538‬‬
‫حکیم بن حزام رضی اللہ عنسہ نسے اسسسلم سسے پہلسے کسے زمسسانے میسسں سسسو غلم آزاد کئے اور‬
‫ضرورت مند مسافروں کو سواری کے لئے سو اونٹ فراہم کئے تھے۔ اسلم قبول کرنے کسسے‬
‫بعد بھی انہوں نے سو اونٹ ضرورت مندوں کو دیے اور سسسو غلم آزاد کئے۔ وہ کہتسے ہیسسں کسہ‬
‫انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے پوچھا‪" ،‬یا رسول اللہ! ان نیک اعمسسال کسسے‬
‫بارے میں آپ کیا فرماتے ہیں جو میں دور جاھلیت میں کر چکا؟" آپ نے فرمایا‪" ،‬جو نیکیاں‬
‫تم اسلم لنے سے پہلے کر چکے ہو‪ ،‬وہ سب کی سب قائم رہیں گی۔"‬

‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم غیر مسلم غلموں کو آزاد کیا کرتے تھے۔ ابن ابسسی شسسیبہ‬
‫نے اپنی کتاب "مصنف" میں غیر مسسسلم غلمسسوں کسسی آزادی کسسا باقاعسسدہ بسساب قسسائم‬
‫کرتے ہوئے اس میں سیدنا عمر‪ ،‬علی اور ابن عمر رضی اللہ عن ہم ک سے غیسسر مسسسلم‬
‫غلم آزاد کرنے کا تذکرہ کیا ہے۔‬
‫ك ‪ ،‬ع َن أ َبي هل َل ‪ ،‬ع َ ُ‬
‫ري ٌ‬
‫ق ‪َ ،‬قا َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫ض‬
‫س‬
‫م سَر ‪ ،‬فَك َسسا َ‬
‫نأ ّ‬
‫مُلوك ًسسا ل ِعُ َ‬
‫م ْ‬
‫ت َ‬
‫ل ‪ :‬ك ُن ْس ُ‬
‫ْ ِ‬
‫ن ي َعْسرِ ُ‬
‫ْ‬
‫ِ ٍ‬
‫ش ِ‬
‫ٍ‬
‫َ‬
‫قو ُ‬
‫قسسه‪) .‬مصسسنف ابسسن ابسسی‬
‫ضسَر أع ْت َ َ‬
‫م وَي َ ُ‬
‫ح ِ‬
‫مسسا ُ‬
‫ل ‪} :‬ل َ إك َْراه َ فِسسي الس ّ‬
‫سل َ َ‬
‫ع َل َي ْهِ ال ِ ْ‬
‫ن{ فَل َ ّ‬
‫دي ِ‬
‫شيبة‪ ،‬باب فی عتق اليهودی و النصراني‪ ،‬حديث ‪(12690‬‬
‫ُاسق کہتے ہیں کہ میں عمر رضی اللہ عنہ کا غلم تھا۔ وہ مجھے اسلم قبول کرنے کی دعوت‬
‫دیا کرتے تھے اور یہ بھی کہتے تھے‪" ،‬دین کے معاملے میسسں کسسوئی جسسبر نہیسسں ہے۔" ایسسک مرتب سہ‬
‫اسق کو ان کے سامنے پیش کیا گیا تو انہوں نے اسق کو آزاد کر دیا۔‬

‫سعيد قال ‪ :‬حدثنا أبو شهاب عن يحيى بن سعيد ‪ :‬أن عمر بن عبد العزيز أعتق عبدا ً‬
‫له نصرانيا ً ‪ ،‬فمات وترك مال ً ‪ ،‬فأمر عمر بن عبد العزيز ما ترك أن يجعسسل فسسي بيسست‬
‫المال ‪) .‬سنن سعيد بن منصور؛ كتاب الميراث(‬
‫سیدنا عمر بن عبدالعزیز رضی اللہ عنہ نے اپنا ایک عیسائی غلم آزاد کیا۔ جسسب وہ فسسوت ہوا‬
‫تو اس کے ترکے میں مال تھا )اور اس کا سوائے عمسسر بسسن عبسسدالعزیز ک سے اور کسسوئی وارث‬
‫بھی نہ تھا۔( عمر نے اس کے ترکے کو بیت المال میں داخل کر دیا۔‬
‫‪59‬‬

‫یہی وجہ ہے کہ مسلمانوں کے اہل علم جیسے امام مالک نے موطاء )پیراگسسراف نمسسبر‬
‫‪ 2258‬میں( غیر مسلم غلموں کو آزاد کرنے کو نیکی قرار دیا ہے۔ اس واقعسے کسسو‬
‫گولڈ زیہر نے بھی اپنی کتاب "محمد اینڈ اسلم" میں بیان کیا ہے۔‬
‫مسلمانوں کے ہاں یہ عمل بھی رائج رہا ہے کہ وہ غیر مسلم غلموں کو خود بھی‬
‫آزاد کیا کرتے تھے اور دشمنوں سے بھی خرید کر آزاد کروایا کرتے تھے۔ ڈاکٹر حمیسسد‬
‫اللہ لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪A document of the time of the Umaiyad caliph 'Umar ibn 'Abdal-'Aziz (reported by Ibn‬‬
‫‪Sa'd) says that the payment of the ransoms by the Muslim government includes liberating‬‬
‫‪even the non-Muslim subjects who would have been made prisoners by the enemy. (Dr.‬‬
‫)‪Hamidullah, Introduction to Islam‬‬
‫اموی خلیفہ عمر بن عبدالعزیز )علیہ الرحمۃ( کسے دور کسے ایسسک سسرکاری کاغسذ کسے مطسابق‬
‫جسے ابن سعد نے بیان کیا ہے‪ ،‬مسلمان حکومت کو اپنے ایسے غیر مسلم شہریوں کسسا فسسدیہ‬
‫ادا کرنا چاہیے جو کہ دشمن کی قید میں ہوں۔‬

‫قیمتی غلموں کی آزادی‬
‫ایسا ممکن تھا کہ ان آیات اور احادیث کو سن کر لوگ اپن سے کا ہل اور نکم سے قسسسم‬
‫کے غلموں کو تسسو آزاد کسسر دیتسے لیکسسن قیمسستی اور محنسست کرنسے والسے غلمسسوں کسسو‬
‫بدستور غلم رکھتے۔ اس کے بارے میں ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫حدثنا عبيد الله بن موسى‪ ،‬عن هشام بن عروة‪ ،‬عن أبيه‪ ،‬عن أبي مراوح‪ ،‬عن أبي‬
‫ذر رضي الله عنه قال‪ :‬سألت النبي صلى الله عليه وسلم‪ :‬أي العمل أفضل؟ قال‪:‬‬
‫)إيمان بالله‪ ،‬وجهاد في سبيله(‪ .‬قلت‪ :‬فأي الرقاب أفضل؟ قال‪) :‬أغلها ثمنا‪،‬‬
‫وأنفسها عند أهلها(‪ .‬قلت‪ :‬فإن لم أفعل؟ قال‪) :‬تعين صانعا‪ ،‬أو تصنع لخرق(‪ .‬قال‪:‬‬
‫فإن لم أفعل؟ قال‪) :‬تدع الناس من الشر‪ ،‬فإنها صدقة تصدق بها على نفسك(‪.‬‬
‫)بخاری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2518‬‬
‫ابوذر غفاری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے نبی صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم سسے پوچ ھا‪،‬‬
‫"کون سا عمل سب سے بہتر ہے؟" آپ نے فرمایا‪" ،‬اللہ پسسر ایمسسان لنسسا اور اس کسسی راہ میسسں‬
‫جہاد کرنا۔" میں نے عرض کیا‪" ،‬کس غلم کو آزاد کرنا سب سے افضل ہے؟" آپ نے فرمایا‪،‬‬
‫"جو سب سے زیادہ قیمتی ہو اور اپنے آقاؤں کے لئے سب سے پسندیدہ ہو۔" میسسں نسے عسسرض‬
‫کیا‪" ،‬اگر میں ایسا نہ کر سکوں تو؟" آپ نے فرمایا‪" ،‬تو پھر کسی کساریگر یسا غیسر ہنسر منسد‬
‫فرد کی مدد کرو۔" میں نے عرض کیا‪" ،‬اگر میسسں یسہ ب ھی نسہ کسسر سسسکوں؟" آپ نسے فرمایسسا‪،‬‬
‫"لوگوں کو اپنی برائی سے بچاؤ۔ یہ بھی ایک صدقہ ہے جو تم خود اپنے آپ پر کرو گے۔"‬

‫حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غلموں کو جلدی جلدی آزاد کرنے کی‬
‫ترغیب دلئی۔ آپ نے مسلمانوں کو تلقیسسن کسسی کسہ وہ غلم آزاد کرنسے کسے لئے اپنسسی‬
‫موت کا انتظار نہ کریں بلکہ جلد از جلد غلموں کو آزاد کریں۔‬
‫قال أخبرنا قتيبة بن سعيد ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا أبو الحوص ‪ ،‬عن أبي إسحاق ‪ ،‬عن أبي‬
‫حبيبة ‪ ،‬عن أبي الدرداء أن رسول الله ‪ r‬قال الذي يعتق عند الموت كالذي يهدي‬
‫بعدما شبع ‪) .‬سنن نسائی الکبری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(4873‬‬
‫ابو دردا رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایسسا‪" :‬جسسو‬
‫شخص بھی مرتے وقت غلم آزاد کرتا ہے‪ ،‬وہ تو اس شخص کی طرح ہے جو )گنسساہوں سسسے(‬
‫اچھی طرح سیر ہونے کے بعد )نیکی کی طرف( ہدایت پاتا ہے۔‬

‫‪60‬‬

‫لون ڈیوں کی آزادی‬
‫جیسا کہ اوپر بیان کیا جا چکا ہے کہ اس دور میں لونڈیوں کی اخلقی حالت اچھی نہ‬
‫تھی۔ نوجوان لونڈیوں کو عصمت فروشی کی تربیت دے کر انہیں تیار کیا جاتا۔ ی ہی‬
‫وجہ ہے کہ ان سے کوئی شریف آدمی شادی کرنے کو تیار نہ ہوتسسا ت ھا۔ حضسسور صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ان لونڈیوں کی اخلقسی تربیسست کسسر کسے انہیسسں آزاد کرنسے کسی‬
‫ترغیب دلئی۔‬
‫أخبرنا محمد‪ ،‬هم ابن سلم‪ ،‬حدثنا المحاربي قال‪ :‬حدثنا صسسالح بسسن حيسسان قسسال‪ :‬قسسال‬
‫عامر الشعبي‪ :‬حدثني أبو بردة‪ ،‬عسن أبيسه قسال‪ :‬قسال رسسول اللسه صسلى اللسه عليسه‬
‫وسلم‪) :‬ثلثة لهم أجران‪ :‬رجل من أهل الكتاب‪ ،‬آمن بنبيه وآمسسن بمحمسسد صسسلى اللسسه‬
‫عليه وسلم‪ ،‬والعبد المملوك إذا أدى حق الله وحق مسواليه‪ ،‬ورجسل كسانت عنسده أمسة‬
‫يطؤها‪ ،‬فأدبها فأحسن أدبها‪ ،‬وعلمها فأحسن تعليمها‪ ،‬ثم أعتقها فتزوجها‪ ،‬فله أجران‪.‬‬
‫)بخاری‪ ،‬کتاب العلم‪ ،‬حديث ‪(97‬‬
‫ابو بردہ رضی اللہ عنہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم‬
‫نے فرمایا‪" ،‬تین قسم کے افراد کے لئے دوگنا اجر ہے‪ :‬اھل کتاب میں سے کوئی شسسخص جسسو‬
‫اپنے نبی پر ایمان لیا اور اس کے بعد محمد پر بھی ایمان لیسا۔ ایسسا غلم جسو اللسہ کسا حسق‬
‫بھی ادا کرتا ہے اور اپنے مالکان کی تفویض کردہ ذمہ داریوں کسسو ب ھی پسسورا کرتسسا ہے۔ ایسسسا‬
‫شخص جس کے پاس کوئی لونڈی ہو جس سے وہ ازدواجی تعلقات رکھتا ہو‪ ،‬وہ اسے ب ہترین‬
‫اخلقی تربیت دے‪ ،‬اسے اچھی تعلیم دلوائے‪ ،‬اس کےبعد اسے آزاد کر کے اس سے شادی کر‬
‫لے تو اس کے لئے بھی دوہرا اجر ہے۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نسے خسسود اس کسسی مثسسال قسسائم فرمسسائی۔ آپ نسے‬
‫سیدہ صفیہ اور ریحانہ رضی اللہ عنہما کو آزاد کر کے ان ک سے سسساتھ نکسساح کیسسا۔ اسسسی‬
‫طرح آپ نے اپنی لونڈی سیدہ ام ایمن رضی اللہ عنہا کو آزاد کر ک سے ان کسسی شسسادی‬
‫سیدنا زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ سے کی۔ آپ نے اپنی ایک لونڈی سلمی رضسسی اللسہ‬
‫عنہا کو آزاد کر کے ان کی شادی ابو رافع رضی اللہ عنہ سے کی۔‬

‫غلموں کی آزادی میں رسول الل ہ کی ذاتی دلچسپی‬
‫رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسسو غلمسسوں کسسی آزادی سسے ذاتسسی طسسور پسسر‬
‫دلچسپی تھی۔ اوپر بیان کردہ عمومی احکامسسات کسے علوہ آپ ب ہت سسے مواقسسع پسسر‬
‫خصوصی طور پر غلموں کو آزاد کرنے کی ترغیب دیا کرتے تھے۔ بہت سسسی جنگسسوں‬
‫جیسے غزوہ بدر‪ ،‬بنو عبدالمصطلق اور حنین میں فتح کے بعد آپ نے جنگی قیسسدیوں‬
‫کو غلم نہ بنانے کے لئے عملی اقدامات کئے اور انہیں آزاد کروا کسسر ہی دم لیسسا۔ اس‬
‫کے علوہ بھی آپ مختلف غلموں کے بارے میں ان کے مالکوں سے انہیسسں آزاد کرن سے‬
‫کی سفارش کیا کرتے تھے۔‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا سليمان بن داود حدثنا أبو عامر عن الحسن عن‬
‫سعد مولى أبي بكر وكان يخدم النبي صلى الله عليه وسلم وكان النبي صلى الله‬
‫عليه وسلم يعجبه خدمته فقال‪ :‬يا أبا بكر أعتق سعدا فقال‪ :‬يا رسول الله ما لنا ما‬
‫هن غيره قال‪ :‬فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم‪ :‬أعتق سعدا‪) .‬مسند احمد‪،‬‬
‫باب سعد مولی ابوبکر(‬
‫ابوبکر صدیق کے آزاد کردہ غلم سعد رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ وہ نبی صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ‬
‫وسلم کی خدمت کیا کرتے تھے۔ نبی صلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ان کسسی خسسدمت سسے ب ہت‬
‫خوش ہوئے اور فرمانے لگے‪" ،‬ابوبکر! سعد کو آزاد کر دو۔" ابو بکسر کہنسے لگسے‪" ،‬یسا رسسول‬
‫اللہ! میرے پاس ان کے علوہ اور کوئی غلم نہیں ہے۔" آپ نے پھر فرمایا‪" ،‬سعد کسسو آزاد کسسر‬
‫دو۔" چنانچہ ابوبکر نے سعد کو آزاد کر دیا۔‬
‫‪61‬‬

‫جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سیدنا معاذ بن جبسل رضسی اللسہ عنسہ کسو‬
‫یمن کا گورنر مقرر فرمایا تسسو انہیسسں ب ہت سسسی نصسسیحتیں ارشسساد فرمسسائیں۔ آپ نسے‬
‫غلموں کی آزادی کو اللہ تعالی کے نزدیک سب سے زیادہ پسندیدہ کام قرار دیا۔‬
‫يا معاذ ما خلق الله شيئا على وجه الرض أبغض إليه من الطلق وما خلسسق اللسسه عسسز‬
‫وجل على وجه الرض أحب إليه من العتساق وإذا قسسال الرجسل لمملسسوكه أنست حسر إن‬
‫شاء اللسه فهسو حسر ول اسستثناء لسه وإذا قسال لمرأتسه أنست طسالق إن شساء اللسه فلسه‬
‫استثناؤه ول طلق عليه )ابن عدى ‪ ،‬والبيهقى ‪ ،‬والديلمى عن معاذ (أخرجه ابن عدى‬
‫)‪ ، 2/279‬ترجمسسة ‪ 443‬حميسسد بسسن مالسسك( ‪ ،‬والسسبيهقى )‪ ، 7/361‬رقسسم ‪(14897‬س ‪،‬‬
‫ضسسا ‪ :‬السسدارقطنى )‪ ، (4/35‬وابسسن‬
‫والسسديلمى )‪ ، 5/378‬رقسسم ‪ . (8485‬وأخرجسسه أي ً‬
‫الجوزى فى العلل المتناهية )‪ ، 2/643‬رقم ‪) . (1066‬جمع الجوامع(‬
‫اے معاذ! اللہ تعالی نے روئے زمین پر جو چیزیں تخلیسسق کسسی ہیسسں‪ ،‬ان میسسں طلق سسے زیسسادہ‬
‫ناپسندیدہ کام کوئی نہیں ہے اور اس نے زمین پر جو چیزیں تخلیق کی ہیں ان میں غلم آزاد‬
‫کرنے سے زیادہ اچھا کام کوئی نہیں ہے۔ اگر کوئی شخص اپنے غلم سے کہے‪ ،‬اگسسر الل سہ چسساہے‬
‫تو تم آزاد ہو تو وہ آزاد ہو جاتا ہے اور اس میں کسی چیسز کسا اسستثناء نہیسں ہے۔ اگسر کسوئی‬
‫شخص اپنی بیوی سے کہے کہ اللہ چاہے تو تمہیں طلق ہے تو اس صورت میں استثناء موجود‬
‫ہے اور طلق واقع نہیں ہو گی۔‬

‫کوئی شخص یہ کہہ سکتا ہے کسہ غلمسوں کسو آزاد کرنسے کسی یسہ ترغیسب محسض ایسک‬
‫ترغیب ہی تو تھی۔ اس میں مسلمانوں کو کسی بات کا قانونی طور پر پابنسسد نہیسسں‬
‫کیا گیا تھا۔ اس وجہ سے محض ترغیب دینے کا کیا فائدہ؟‬
‫یہ بات صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کی دین اسلم کے احکامسسات اور رسسسول الل سہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ارشادات سے محبت اور وابستگی سے عدم واقفیت کا‬
‫نتیجہ ہے۔ صحابہ کرام اور ان کے تربیت یافتہ تابعین تو رسول اللہ صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم کی زبان اقدس سے نکلی ہوئی ہر بات کو پورا کرنے کے لئے ہر وقت تیار رہا‬
‫کرتے تھے۔ اس کی ایک مثال اوپر گزر چکی ہے جس میں سیدنا زین العابدین رضی‬
‫اللہ عنہ نے حدیث سنتے ہی اپنا قیمتی ترین غلم آزاد کر دیا تھا۔‬
‫فقہی اور قانونی اعتبار سے انفرادی طور پسسر غلم کسسو آزاد کرنسسا اگرچ سہ محسسض‬
‫ایک مستحب عمل ہی تھا لیکن بحیثیت مجموعی مسلمانوں کو یہ حکم دیا گیسسا ت ھا‬
‫کہ وہ غلموں کا درجہ خود تک بلند کریں۔ جب دیسسن کسسا کسسوئی حکسسم مسسسلمانوں کسسو‬
‫بحیثیت اجتماعی دیا جائے تو اس کسی ادائیگسی حسسب اسستطاعت ہر مسسلمان پسر‬
‫ضروری ہوتی ہے۔ امیر افراد پسسر ان کسی طسساقت کسے مطسسابق اور غربسساء پسسر ان کسی‬
‫استطاعت کے مطابق۔‬
‫یہی وجہ ہے کہ اللہ تعالی کے اس حکم کے نتیجے میں مسلمانوں میں سے امیر و‬
‫غریب افراد نے اپنی اپنی استطاعت کے مطابق اپنی ذمہ داری محسوس کرتے ہوئے‬
‫غلمی کے خاتمے کے لئے جو کچھ کیا‪ ،‬اس کی تفصیلت ہم آگے بیسسان کسسر ر ہے ہیسسں۔‬
‫رسول اللہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسسی اس ترغیسسب و تحریسسک کسے نسستیجے میسسں‬
‫مسلمانوں کے ہاں غلموں کی آزادی ایک نیک اور متواتر عمل کے طور پر جاری ہو‬
‫گئی اور موجودہ دور میں غلمی کے مکمل خاتمے تک جاری رہی۔‬

‫‪62‬‬

‫غلموں کی آزادی کی مثال قائم‬
‫کرنا‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غلموں کو آزاد کرنے کی محض ترغیسسب ہی‬
‫نہ دی بلکہ ایسا کرنسے کسی بسذات خسود مثسال قسائم فرمسائی۔ آپ جسب یسہ محسسوس‬
‫فرماتے کہ آپ کا کوئی غلم آزادانہ طور پر زندگی بسر کرنے کے لئے تیار ہو گیسا ہے‬
‫تو اسے آزاد فرما دیتے۔ یہ سلسلہ آپ کی پوری زندگی میں جسساری ر ہا حسستی ک سہ آپ‬
‫کی وفات کے وقت آپ کے پاس کوئی غلم نہ تھا۔‬
‫حدثنا إبراهيم بن الحارث‪ :‬حدثنا يحيى بن أبي بكير‪ :‬حدثنا زهير بن معاويسسة الجعفسسي‪:‬‬
‫حدثنا أبو إسحاق‪ ،‬عن عمرو بن الحارث‪ ،‬ختن رسول الله صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم‪،‬‬
‫أخي جويرية بنت الحارث‪ ،‬قال‪ :‬ما ترك رسول الله صلى الله عليه وسلم عنسسد مسسوته‬
‫درهما‪ ،‬ول دينارا‪ ،‬ول عبدا‪ ،‬ول أمة‪ ،‬ول شيئا‪ ،‬إل بغلته البيضاء‪ ،‬وسلحه‪ ،‬وأرضا جعلها‬
‫صدقة‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب الوصايا‪ ،‬حديث ‪(2739‬‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسلم کسے بسسرادر نسسسبتی عمسرو بسن حسارث جسسو ام المسسومنین‬
‫جویریہ بنت حارث رضی اللہ عنہما کے بھائی ہیں‪ ،‬کہتے ہیں‪ :‬رسول الل سہ صسسلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ‬
‫وسلم نے اپنی وفات کے وقت درھم‪ ،‬دینار‪ ،‬غلم‪ ،‬لونڈی اور کوئی چیز نہ چ ھوڑی ت ھی۔ ہاں‬
‫ایک سفید خچر‪ ،‬کچھ اسلحہ )تلواریں وغیرہ( اور کچھ زمین چھوڑی تھی جسے آپ صدقہ کسسر‬
‫گئے تھے۔‬

‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے کزن سیدنا عبداللہ ابن عبسساس رضسسی اللسہ عنہمسسا‬
‫جو آپ کی وفات کے وقت آپ کے قریب موجود تھے‪ ،‬بیان کرتے ہیں‪:‬‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا عفان وأبو سعيد المعني قال‪ :‬حدثنا ثابت حدثنا هلل‬
‫بن خباب عن عكرمة عن ابن عباس أن النبي صلى الله عليه وسلم التفت إلسسى أحسسد‬
‫فقال‪ :‬والذي نفس محمد بيده ما يسرني أن أحدا يحول لل محمسسد ذهبسسا أنفقسسه فسسي‬
‫سبيل الله أموت يوم أموت أدع منه دينارين إل دينارين أعدهما لدين إن كسسان فمسسات‬
‫وما ترك دينارا ول درهما ول عبدا ول وليدة وترك درعه رهونة عند يهودي على ثلثين‬
‫صاعا من شعير‪) .‬مسند احمد‪ ،‬باب عبداللہ بن عباس(‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم )اپنی وفات سے پہلے( کسی کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا‪،‬‬
‫"اس کی قسم جس کے قبضے میں محمد کی جان ہے‪ ،‬یہ معاملہ میرے لئے آسان نہیں ہے کسسہ‬
‫کوئی محمد کے خاندان کو اللہ کی راہ میں خرچ کیا جانے وال سونا دے۔ مجھے یہ پسند نہیسسں‬
‫ہے کہ میں آج دو دینار ہی چھوڑ کر فوت ہو جاؤں سوائے اس کے کسہ وہ قسسرض ادا کرنسے کسے‬
‫لئے رکھے ہوئے ہوں۔ آپ نے ایسی حالت میں وفات پائی کہ آپ نے ترک سے میسسں کسسوئی دینسسار‪،‬‬
‫درہم‪ ،‬غلم‪ ،‬لونڈی نہ چھوڑی۔ آپ نے ترکے میں ایک زرہ چ ھوڑی جسسو ک سہ تیسسس صسساع جسسو کسسا‬
‫قرض لینے کے باعث ایک یہودی کے پاس رہن رکھی ہوئی تھی۔‬

‫ان احادیث کے بارے میں بعض لوگ یہ کہ سکتے ہیں کہ مسلمانوں کے دو بڑے مکاتب‬
‫فکر یعنی شیعہ اور سنی کا ان پر اتفاق نہیں ہے۔ حقیقت اس سے مختلف ہے۔ ا ہل‬
‫تشیع کا اس معاملے میں اختلف اس بات پر نہیں ہے کہ رسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے ترکے میں کوئی غلم یا لونڈی چھوڑی تھی یا نہیں؟ ان کا اختلف بسساغ‬
‫فدک سے متعلق ہے جسے وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے خاندان کا حسسق‬
‫سمجھتے ہیں۔ اہل سنت کے نزدیک حضور صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسسی چ ھوڑی‬
‫ہوئی جائیداد صدقہ تھی اور اسے سرکاری خزانے کا حصہ ہونا چاہیے تھا۔‬
‫اگر حضور نے اپنے ترکے میں کوئی لونسڈی یسا غلم چ ھوڑا ہوتسا تسسو سسیدہ فساطمہ‬
‫رضی اللہ عنہا اس کا بھی دعوی کرتیں جبکہ ا ہل تشسسیع کسسی روایسسات ایسسسی کسسسی‬
‫غلم یا لونڈی کے ذکر سے خالی ہیں۔ اس وجہ سے اس معاملے میں سنی اور شسسیعہ‬
‫‪63‬‬

‫دونوں مکاتب فکر اس بات پر متفق ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نسسے‬
‫اپنے تمام غلموں کو آزاد کر دیا تھا۔‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم نسے جسسن غلمسسوں اور لونسڈیوں کسسو آزادی عطسسا‬
‫فرمائی ‪ ،‬ان میں زید بن حارثہ‪ ،‬ثوبان‪ ،‬رافع‪ ،‬سلمان فارسی‪ ،‬ماریہ‪ ،‬ام ایمن‪ ،‬ریحانہ‬
‫رضی اللہ عنہم مشہور ہوئے۔ ابن جوزی نے تلقیح الفہوم میں رسسسول الل سہ صسسلی اللسہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کے جن آزاد کردہ غلموں کے نسسام گنسسوائے ہیسسں ان کسسی تعسسداد ‪ 41‬ہے‬
‫جبکہ انہوں نے آپ کی ‪ 12‬آزاد کردہ لونڈیوں کا تذکرہ کیا ہے۔‬
‫بہت سے غلموں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے مسلمانوں کسے بیسست‬
‫المال کی رقم سے خرید کر آزاد فرمایا۔ ان کا درجہ بلند کرنے کے لئے انہیسسں آپ نسے‬
‫اپنا مولی قرار دے کر انہیں اپنے خاندان میں شامل کر دیا۔ ابسسن جسسوزی بیسسان کرت سے‬
‫ہیں کہ مرض وفات میں آپ نے چسسالیس غلمسسوں کسسو خریسسد کسسر آزاد فرمایسسا۔ )تاریسسخ‬
‫المم و الملوک‪ ،‬ج ‪(4‬‬
‫غلم آزاد کرنے کی یہ مثال نہ صرف حضور صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے قسسائم‬
‫فرمائی بلکہ آپ کسے ا ہل بیسست اور قریسسبی صسسحابہ نسے ب ھی ایسسسا ہی کیسسا۔ اس کسسی‬
‫تفصیلت ہم غلموں کی آزادی کی تحریک کے نتائج کے باب میں بیان کریں گے۔‬

‫مکاتبت ک ے ادار ے کا قیام‬
‫مکاتبت کا سماجی ادارہ عرب میں پہلے سے موجود تھا یا نہیں تھا‪ ،‬اس معاملے میں‬
‫اسلم سے پہلے کی تاریخ عرب لکھنے والے مسسورخین میسسں اختلف ہے۔ اگسسر ی سہ ادارہ‬
‫موجود بھی تھا تو یہ مالک کی مرضی پر ہوا کرتا تھا کہ وہ غلم کو اس طریقے سسسے‬
‫آزاد کرے یا نہ کرے۔ ابن سعد بیان کرتے ہیں کہ قدیم عرب میں مکاتبت کا رواج بہت‬
‫ہی کم تھا۔ )دیکھئے طبقات الکبری‪ ،‬باب ابوعبس بن جبر(‬

‫مکاتبت ک ے ادار ے کا قانونی تحفظ‬
‫دین اسلم نے اس ادارے کو قانونی شکل دی اور مالکوں کے لئے یہ لزم قرار دیا کہ‬
‫جب ان کے غلم ان سے اپنی آزادی خریسسدنا چساہیں تسسو وہ اس سسے انکسسار نسہ کریسسں۔‬
‫ارشاد باری تعالی ہے۔‬
‫َ‬
‫م فَ َ‬
‫ن‬
‫م َ‬
‫م ِ‬
‫ب ِ‬
‫َوال ّ ِ‬
‫م إِ ْ‬
‫ن ال ْك َِتا َ‬
‫ن ي َب ْت َُغو َ‬
‫خْيرا ً َوآُتوهُ ْ‬
‫م ِفيهِ ْ‬
‫مت ُ ْ‬
‫ن ع َل ِ ْ‬
‫كات ُِبوهُ ْ‬
‫مان ُك ُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َ ْ‬
‫ما َ‬
‫م ّ‬
‫مس ْ‬
‫ذي َ‬
‫م ۔ )النور ‪(24:33‬‬
‫ل الل ّهِ ال ّ ِ‬
‫ذي آَتاك ُ ْ‬
‫َ‬
‫ما ِ‬
‫تمہارے غلموں میں سے جو مکاتبت کرنا چساہیں‪ ،‬ان سسے مکسساتبت کسسر لسو اگسسر تسسم ان میسسں‬
‫بھلئی دیکھتے ہو اور ان کو اس مال میں سے دو جو اللہ نے تمہیں دیا ہے۔‬

‫اس آیت کے الفاظ صریحا ً اس بات پر دللت کرتے ہیں کہ غلم اگسسر اپنسسی آزادی کسسو‬
‫خریدنے کا طالب ہو تو اس سے مکاتبت کرنا ضروری ہے۔ "اگسر تسم ان میسں بھلئی‬
‫دیکھتے ہو" سے مراد سب ا ہل علسم بشسمول سسیدنا عبسداللہ بسن عبساس رضسی اللسہ‬
‫عنہما‪ ،‬نے یہی لیا ہے کہ ان غلموں کے پاس اتنسسا مسسال ہو یسسا وہ اتنسسا مسسال کمسسانے کسسی‬
‫صلحیت رکھتے ہوں جس سے وہ اپنی آزادی خرید سکیں۔ )دیکھیے مسند ابن ابی شسسیبہ‪،‬‬
‫حدیث ‪ (23306‬علمہ بدر الدین عینی لکھتے ہیں‪:‬‬
‫واحتجوا أيضا بأن هذه الية نزلت في غلم لحويطب بن عبد العسسزى يقسسال لسسه صسسبيح‬
‫سأل موله أن يكاتبه فأبى عليه فأنزل الله تعسسالى هسسذه اليسسة فكسساتبه حسسويطب علسسى‬
‫مائة دينار ووهب له منها عشرين دينارا فأداها وقتل يوم حنين فسسي الحسسرب‪) .‬عينسسی‪،‬‬
‫شرح البخاری‪ ،‬کتاب المکاتب(‬
‫‪64‬‬

‫اہل علم نے اس بات سے بھی دلیل حاصل کی ہے کسہ )مکسساتبت کسسی یسہ آیسست( حسسویطب بسسن‬
‫عبدالعزی رضی اللہ عنہ کے بارے میں نازل ہوئی ہے جنہیں صبیح کہا جاتا تھا۔ ان ہوں ن سے اپن سے‬
‫آقا سے مکاتبت کی درخواست کی جس سے انہوں نے انکار کر دیا۔ اس پر اللہ تعالی نسے یسہ‬
‫آیت نازل فرمائی۔ انہوں نے حویطب سے سو دینار پسسر مکسساتبت کسسر لسسی اور اس میسسں س سے‬
‫بیس دینار انہیں معاف بھی کر دیے۔ انہوں نے یہ رقم ادا کی۔ یہ صاحب جنگ حنین میں شہید‬
‫ہو گئے۔‬

‫اس کے علوہ مالکان‪ ،‬حکومت اور دیگر صاحب ثروت لوگوں کو یہ حکم دیا ہے کہ وہ‬
‫ایسے غلموں کی مدد کریں جو مکاتبت کے خواہاں ہوں۔ اگر صحابہ کرام رضی اللہ‬
‫عنہم کے دور کا جائزہ لیا جائے تو اندازہ ہوتسسا ہے کسہ صسسحابہ غلم کسی درخواسسست پسسر‬
‫مکاتبت کرنے کو ضروری سمجھتے تھے۔ اس ادارے کو باقاعدہ قانونی تحفظ حاصل‬
‫تھا۔ چند مثالیں پیش خدمت ہیں‪:‬‬
‫وقال روح‪ ،‬عن ابن جريج‪ :‬قلت لعطاء‪ :‬أواجسب علسي إذا علمست لسه مسال أن أكساتبه؟‬
‫قال‪ :‬ما أراه إل واجبا‪ .‬وقاله عمرو بن دينار‪ .‬قلت لعطاء‪ :‬تأثره عن أحد‪ ،‬قال‪ :‬ل‪ .‬ثسسم‬
‫أخبرني‪ :‬أن موسى بن أنس أخبره‪ :‬أن سيرين سأل أنسا المكاتبة‪ ،‬وكان كثير المسسال‬
‫فأبى‪ ،‬فانطلق إلى عمر رضي الله عنه فقال‪ :‬كاتبه‪ ،‬فأبى‪ ،‬فضربه بالدرة ويتلو عمر‪:‬‬
‫}فكاتبوهم إن علمتم فيهم خيرا{‪ .‬فكاتبه‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب المکاتب‪ ،‬ترجمة الباب عند‬
‫حديث ‪(2559‬‬
‫ابن جریج کہتے ہیں کہ میں نے عطاء سے پوچھا‪" ،‬کیا مجھ پر یہ لزم ہے کہ اگر مجھے علم ہو‬
‫کہ غلم ادائیگی کر سکتا ہے تو اس سے مکاتبت کر لوں؟" وہ کہنے لگے‪" ،‬میں اسے ضروری‬
‫تو نہیں سمجھتا۔" عمرو بن دینار نے ان سے کہا‪" ،‬کیا آپ کو اس معاملے میں کسی صحابی‬
‫کے قول و فعل کا علم ہے؟" وہ کہنے لگے‪" ،‬نہیں"۔ انہوں نے یسہ موسسی بسن انسس کسے حسوالے‬
‫سے یہ واقعہ بیان کیا‪:‬‬
‫سیرین )جو کہ سیدنا انس رضی اللہ عنہ کے غلم تھے( کے پاس کثیر مال موجود ت ھا۔ ان ہوں‬
‫نے انس رضی اللہ عنہ سے مکاتبت کی درخواست کی۔ انہوں نے انکار کسسر دیسسا۔ وہ یسہ معسساملہ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کی عدالت میں لے گئے۔ انہوں نے )انس سے( کہا‪" :‬مکاتبت کسسرو۔"‬
‫انہوں نے پھر انکار کیا۔ اس پر سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے انہیں درے سسے مسسارا اور یسہ آیسست‬
‫تلوت کی‪" ،‬ان سے مکاتبت کرو اگر تم ان میں بھلئی دیکھتے ہو۔" اب انس نے مکاتبت کر‬
‫لی۔ )یہ روایت طبرانی میں متصل سند کے ساتھ موجود ہے۔(‬

‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے اس عمل کے وقت کثیر تعداد میں صحابہ موجود ت ھے۔‬
‫کسی نے سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کو اس بات سے نہیں روکا کہ وہ انس رضسسی اللسسہ‬
‫عنہ کو سزا کیوں دے رہے ہیں جبکہ انہوں نے کوئی جرم نہیں کیا۔ اس سسے یسہ واضسح‬
‫ہو جاتا ہے کہ اکابر صحابہ مکاتبت کو ضروری قرار دیتے تھے۔ یہ مکسساتب جسسن کسسا نسسام‬
‫سیرین تھا‪ ،‬تابعین کے مشہور امام محمد بن سیرین کے والد تھے۔ بعد کے ادوار میں‬
‫بھی یہی معاملہ رہا۔‬
‫مکاتبوں کے قانونی تحفظ کا یہ عالم تھا کہ مالک کو یہ قطعی اختیسسار حاصسسل ن سہ‬
‫تھا کہ وہ اس معاملے میں الٹی سیدھی شرائط عائد کر کے مکاتبت کے معسساملے کسسو‬
‫لٹکا سکے۔‬
‫َ‬
‫حدث َنا ابن أ َبي زائ ِدة َ ‪ ،‬ع َن ابن ع َون ‪ ،‬ع َن محمد ‪َ ،‬قا َ َ‬
‫م َ‬
‫ْ ُ َ ّ ٍ‬
‫بأ ْ‬
‫كات َ ٌ‬
‫َ ّ َ ْ ُ ِ َ َ‬
‫م سوْل َهُ‬
‫ي َ‬
‫ل ‪ :‬أَراد َ ُ‬
‫ن ي ُعْط ِ َ‬
‫ْ ٍ‬
‫ِ ْ ِ‬
‫ل ‪ :‬أناَ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫قا َ‬
‫ما َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫مال وَقا‬
‫عت ْ َ‬
‫ه ‪ ،‬فَ َ‬
‫ه ‪ ،‬وَأ َ‬
‫ل‪:‬لآ ُ‬
‫ن ِ‬
‫َ‬
‫ما ُ‬
‫ما ‪ ،‬فكت َ َ‬
‫خذه ُ إل ن ُ ُ‬
‫خذ ال َ‬
‫ق ُ‬
‫ه ع ُث َ‬
‫بل ُ‬
‫جو ً‬
‫ل ك ُل ّ ُ‬
‫ال ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ما َرأى ذ َل ِ َ‬
‫مسسا َ‬
‫ج َ‬
‫ل‪) .‬مصسسنف ابسسن ابسسی شسسيبة‪ ،‬حسسديث‬
‫لأ َ‬
‫أع ْ ِ‬
‫ك الّر ُ‬
‫ه نُ ُ‬
‫خذ َ ال ْ َ‬
‫ما ‪ ،‬فَل َ ّ‬
‫جو ً‬
‫طيك َ ُ‬
‫‪(22993‬‬
‫ایک مکاتب نے ارادہ کیا کہ وہ مکاتبت کی پوری رقم کی یک مشسست ادائیگسسی کسسر دے۔ مالسسک‬
‫کہنے لگا‪" ،‬میں تو قسطوں ہی میں لوں گا۔" سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ نے اس کسسی آزادی‬
‫کا فرمان لکھ کر جاری کر دیا اور اس سے مال لے لیا اور مالک س سے فرمایسسا‪" ،‬میسسں تمہیسسں‬
‫قسطوں میں ادائیگی کر دیا کروں گا۔" اس شخص نے جب یہ دیکھا تو پورا مال قبسسول کسسر‬
‫‪65‬‬

‫لیا۔‬

‫َ‬
‫حدث َِني مال ِ ٌ َ‬
‫م َ‬
‫ن‬
‫معَ َرِبيعَ َ‬
‫س ِ‬
‫كاَتب سا ً ك َسسا َ‬
‫ن‪ :‬أ ّ‬
‫ن وَغ َي ْسَره ُ ي َسذ ْك ُُرو َ‬
‫ن أِبي ع َب ْسد ِ الّر ْ‬
‫َ ّ‬
‫ه َ‬
‫ن َ‬
‫ح َ‬
‫ك‪ ،‬أن ّ ُ‬
‫َ‬
‫ة بْ َ‬
‫مس ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ه‪،‬‬
‫ل ِل ْ ُ‬
‫ن ك ِت َسساب َت ِ ِ‬
‫ما ع َلي ْهِ ِ‬
‫ج ِ‬
‫حن َ ِ‬
‫ن ي َد ْفعَ إ ِلي ْهِ َ‬
‫ض ع َلي ْهِ أ ْ‬
‫مي ْرٍ ال َ‬
‫ميعَ َ‬
‫في‪ ،‬وَأن ّ ُ‬
‫ن عُ َ‬
‫ه ع ََر َ‬
‫فَرافِ َ‬
‫مس ْ‬
‫صة ِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫حك َ‬
‫م َ‬
‫ة‪ ،‬فَ سذ َك ََر ذ َل ِس َ‬
‫ه‪،‬‬
‫فَأ ََبى ال ْ ُ‬
‫ص ُ‬
‫دين َ ِ‬
‫م ِ‬
‫م‪ ،‬وَهُوَ أ ِ‬
‫فَرافِ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫ن بْ‬
‫مْرَوا َ‬
‫كات َ ُ‬
‫ك ل َس ُ‬
‫ميُر ال ْ َ‬
‫ب َ‬
‫ة‪ ،‬فَأَتى ال ْ ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ل ل َه ذ َل َ َ‬
‫ك ال ْمسسا َ‬
‫ن ب ِسذ َل ِ َ‬
‫ن‬
‫ن يُ ْ‬
‫ة فَ َ‬
‫ن ال ْ ُ‬
‫فَد َ َ‬
‫قا َ ُ ِ‬
‫ص َ‬
‫ض ِ‬
‫لأ ْ‬
‫مْرَوا ُ‬
‫مْرَوا ُ‬
‫مَر َ‬
‫ك فَأَبى‪ ،‬فَأ َ‬
‫عا َ‬
‫قب َس َ‬
‫فَرافِ َ‬
‫مس َ‬
‫َ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫م َ‬
‫م َ‬
‫مسسا َرأى ذ َِلسس َ‬
‫ل‪ ،‬وََقا َ‬
‫ك‬
‫قد ْ ع َت َ ْ‬
‫ب فَ َ‬
‫ضعَ ِفي ب َي ْ ِ‬
‫ب ‪ :‬اذ ْهَ ْ‬
‫ب‪ ،‬فَُيو َ‬
‫ت‪ .‬فَل ّ‬
‫ق َ‬
‫ل ل ِل ُ‬
‫ت ال َ‬
‫ال ْ ُ‬
‫كات َ ِ‬
‫كات َ ِ‬
‫ما ِ‬
‫ما َ‬
‫ل‪) .‬موطاء مالک‪ ،‬کتاب المکاتب‪ ،‬حديث ‪(2324‬‬
‫ال ْ ُ‬
‫ص ُ‬
‫ض ال ْ َ‬
‫ة قَب َ َ‬
‫فَرافِ َ‬
‫ربیعہ بن ابی عبدالرح ٰمن وغیرہ بیان کرتے ہیں کہ فراصہ بسسن عمیسسر الحنفسسی کسسا ایسسک مکسساتب‬
‫غلم تھا۔ اس نے اپنے مالک کو یہ پیشکش کی کہ وہ کتابت کی پوری قیمت اکٹھی ادا کر کے‬
‫مکمل آزاد ہونا چاہتا ہے۔ فرافصہ نے اس سے انکار کر دیا۔ وہ مکاتب مدینہ کے گورنر مسسروان‬
‫بن الحکم کے پاس گیا اور اس بات کا ان سے تذکرہ کیسسا۔ مسسروان ن سے فرافص سہ کسسو بلیسسا اور‬
‫انہیں ایسا کرنے کا حکم دیا ۔ انہوں نے پھر انکار کر دیا۔ مروان نے حکم دیا ک سہ مکسساتب س سے‬
‫پورا مال لے کر اسے بیت المال میں جمع کر دیا جائے۔ اس کے بعسد ان ہوں نسے مکسساتب سسے‬
‫کہا‪ " ،‬جاؤ‪ ،‬تم تو آزاد ہو گئے۔" فرافصہ نے جب یہ دیکھا تو پورا مال لے لیا۔‬

‫غلموں میں نفسیاتی تبدیلی ک ے ذریع ے آزادی کی‬
‫خوا ہش پیدا کرن ے کی کوشش‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غلموں میں نفسیاتی تبدیلی پیدا کرنسسے کسسی‬
‫کوشش کی کہ وہ آزادی کے خواہش مند بنیں اور اپنے مالکوں سے مکاتبت کر لیسسں۔‬
‫آپ کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫أخبرنا أحمد بن عمرو بن السرح قال أنا بن وهب قال أخبرني الليث عسسن بسسن عجلن‬
‫عن سعيد ‪ ،‬عن أبي هريرة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال ثلثة حق علسسى‬
‫الله عونهم المكاتب الذي يريد الداء والناكح الذي يريد العفاف والمجاهد فسسي سسسبيل‬
‫الله ‪) .‬سنن الکبری نسائی‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(4995‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬تین قسم کے لوگ ایسے ہیں جن کی مدد کو اللہ نے خود پر لزم کسسر لیسسا ہے‪ :‬ایسسسا‬
‫مکاتب جو ادائیگی )کر کے آزاد ہونے( کا ارادہ رکھتا ہو؛ نکاح کرنے وال جو عفت و پاکدامنی‬
‫کا طالب ہو؛ اور اللہ کی راہ میں جہاد کرنے وال۔‬

‫آپ نے بہت سے غلموں کو فسسردا ً فسسردا ً ب ھی ترغیسسب دلئی کسہ وہ اپنسے مالکسسان سسے‬
‫مکاتبت کر لیں۔ اس کی مثال سیدنا سلمان فارسی رضسسی الل سہ عن سہ ہیسسں جسسن کسسی‬
‫مکاتبت چالیس اوقیہ چاندی کے بدلے ہوئی تھی اور رسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم نے اس رقم کو ادا کر دیا تھا )دیکھیے سیرت ابن ہشام(۔‬

‫مکاتبین کی مدد کا نظام‬
‫اس کے علوہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم مالکوں کو ب ھی تلقیسسن کیسسا کرتسے‬
‫تھے کہ وہ قرآن کے حکم کے مطابق غلموں کو مکسساتبت میسسں سسے رقسسم معسساف کسسر‬
‫دیں۔ آپ دوسرے لوگوں کو بھی یہ ترغیب دلیا کرتسے ت ھے کسہ وہ مکسساتبوں کسسی مسسدد‬
‫کریں تاکہ یہ رقم ادا کر کے جلد از جلد مکمل آزاد ہو سکیں۔ صحابہ کسسرام کسسا عمسسل‬
‫بھی اس کے عین مطابق تھا اور وہ اپنسے غلمسسوں کسسو مکسساتبت کسسی رقسسم میسسں سسے‬
‫حسب توفیق کچھ نہ کچھ معاف کر دیا کرتے تھے اور دوسروں ک سے مکسساتب غلمسسوں‬
‫کی مالی مدد کیا کرتے تھے۔‬
‫حدث َنا يحيى ب َ‬
‫ل‪،‬‬
‫ن عَ ِ‬
‫م َ‬
‫م َ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫قي س ٍ‬
‫مد ٍ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن أِبي ب ُك َي ْرٍ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫َ ّ َ َ ْ َ ْ ُ‬
‫م سد ِ ب ْس ِ‬
‫ن ع َب ْد ِ اللهِ ب ْس ِ‬
‫ن ُزهَي ْ َرِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه‬
‫س‬
‫الل‬
‫ل‬
‫سو‬
‫س‬
‫س‬
‫ر‬
‫ل‬
‫سا‬
‫س‬
‫ق‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫سا‬
‫س‬
‫ق‬
‫ه‬
‫ث‬
‫د‬
‫س‬
‫ح‬
‫ف‬
‫ي‬
‫ن‬
‫ح‬
‫بن‬
‫ل‬
‫ه‬
‫س‬
‫ن‬
‫أ‬
‫‪:‬‬
‫ف‬
‫ي‬
‫ن‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ل‬
‫ه‬
‫س‬
‫ن‬
‫ِ‬
‫ّ َ ْ ْ‬
‫ن ع َب ْد ِ اللهِ ب ْ ِ َ ْ ِ ْ ِ ُ َ ْ ٍ‬
‫َ ُ‬
‫ُ َْ ٍ َ ّ ُ‬
‫عَ ْ‬
‫‪66‬‬

‫ل اللهِ ‪ ،‬أ َوْ َ‬
‫سسسَرت ِهِ ‪ ،‬أ َْو‬
‫ن أَ َ‬
‫جاه ِ ً‬
‫م َ‬
‫عا َ‬
‫ما ِفسسي ع ُ ْ‬
‫دا ِفي َ‬
‫غارِ ً‬
‫ن ُ‬
‫صلى الله عليه وسلم ‪َ :‬‬
‫سِبي ِ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫م َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫م ل ظِ ّ‬
‫ه‪) .‬مصسسنف ابسسن ابسسی شسسيبة‪،‬‬
‫ه ِفي ظ ِلهِ ي َوْ َ‬
‫ل إل ظ ِل س ُ‬
‫ه الل ُ‬
‫كات ًَبا ِفي َرقَب َت ِهِ ‪ ،‬أظ َل ّ ُ‬
‫ُ‬
‫کتاب المکاتب‪ ،‬حديث ‪ ،23474‬مستدرک حاکم‪ ،‬کتاب المکاتب‪ ،‬حديث ‪(2860‬‬
‫سیدنا سھل بن حنیف رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ عیہ و ٰالسسہ وسسسلم‬
‫نے فرمایا‪" :‬جس شخص نے اللہ کی راہ میں جہاد کرنے والے‪ ،‬یسسا تنگدسسستی کسسی حسسالت میسسں‬
‫جرمانہ ادا کرنے والے یا آزادی کے طالب مکاتب کی مدد کی‪ ،‬اللہ اسے قیامت کے اپنا خسساص‬
‫سایہ نصیب کرے گا۔ اس دن اس کے علوہ کوئی اور سایہ بھی نہ ہو گا۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی اس ترغیب کا کیا اثر ہوا۔ اس کسسا انسسدازہ ان‬
‫روایات سے لگایا جا سکتا ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫َ‬
‫حافِ ُ‬
‫ن‬
‫سس ْ‬
‫ظ أَ ْ‬
‫أَ ْ‬
‫حب ّسسا َ‬
‫ن َ‬
‫فَيا َ‬
‫حد ّث ََنا ال ْ َ‬
‫خب ََرَنا أُبو ال ْوَِليد ِ َ‬
‫خب ََرَنا أُبو ع َب ْد ِ الل ّهِ ال ْ َ‬
‫ن ُ‬
‫ح َ‬
‫ن ع َس ْ‬
‫ن بْ ُ‬
‫س ُ‬
‫ن ب ْس ِ‬
‫َ‬
‫ه قَسسا َ‬
‫ل‪:‬‬
‫حن َ ِ‬
‫ى َ‬
‫ن فُل ًَنا ال ْ َ‬
‫داَناِج أ ّ‬
‫ن ع َب ْد ِ الل ّهِ ال ّ‬
‫مَباَر ِ‬
‫ن َ‬
‫مو َ‬
‫ح سد ّث َ ُ‬
‫ن ال ْ ُ‬
‫ُ‬
‫سِعيد ٍ ع َ ْ‬
‫ك عَ ْ‬
‫ف َّ‬
‫ن اب ْ ِ‬
‫سى ع َ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه‬
‫معَةٍ ف َ‬
‫سى َر ِ‬
‫ه فكا َ‬
‫مكات َ ٌ‬
‫م ُ‬
‫قا َ‬
‫ت ي َوْ َ‬
‫ن أوّل َ‬
‫مو َ‬
‫ل َرأي ْت ُ ُ‬
‫ه ع َن ْ ُ‬
‫ى الل ُ‬
‫ب إ ِلى أِبى ُ‬
‫م ُ‬
‫ج ُ‬
‫شهِد ْ ُ‬
‫سائ ِ ٍ‬
‫ض َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ٌ‬
‫ْ‬
‫قا َ‬
‫حّتى‬
‫م‬
‫ه‬
‫را‬
‫د‬
‫وال‬
‫ب‬
‫يا‬
‫ث‬
‫ال‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫إ‬
‫ت‬
‫ف‬
‫ذ‬
‫ُ‬
‫ق‬
‫ف‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫س‬
‫نا‬
‫ال‬
‫ث‬
‫ح‬
‫ف‬
‫ب‬
‫ت‬
‫كا‬
‫م‬
‫ل‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ث‬
‫م‬
‫ن‬
‫سا‬
‫ن‬
‫إ‬
‫نى‬
‫إ‬
‫‪:‬‬
‫فَ َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ِ ْ ِ ْ ِ‬
‫ْ ِ‬
‫َ ُ َ َّ ِ ُ َ‬
‫َ‬
‫ُ َ ٌ‬
‫ل ِّ ِْ َ ٌ ُ‬
‫ّ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م َ‬
‫ض َ‬
‫َقا َ‬
‫مائ َةِ د ِْرهَم ٍ فَأَتى‬
‫ل ث َل َث ُ ِ‬
‫ه وَفَ َ‬
‫سِبى َفان ْطلقَ إ ِلى أهْل ِهِ فَوَ َ‬
‫ل َ‬
‫ح ْ‬
‫كات َب َت َ ُ‬
‫م قَد ْ أع ْطوْه ُ ُ‬
‫جد َهُ ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫س‪) .‬سنن الکبری بيهقى‪ ،‬كتسساب‬
‫حوِهِ ِ‬
‫جعَلَها ِفى ن َ ْ‬
‫ن يَ ْ‬
‫مَره ُ أ ْ‬
‫سى فَ َ‬
‫مو َ‬
‫ه فَأ ْ‬
‫سأل ُ‬
‫أَبا ُ‬
‫م َ‬
‫ن الّنا ِ‬
‫قسم الصدقات‪ ،‬حديث ‪(13192‬‬
‫ایک حنفی بیان کرتے ہیں کہ میسسں جمعسہ کسسی نمسساز میسسں حاضسسر ت ھا تسسو ایسسک مکسساتب سسسیدنا‬
‫ابوموسی اشعری رضی اللہ عنہ کے پاس آ کر کھڑا ہوا۔ میں نے وہ پہل سائل دیکھا تھا جو کہہ‬
‫رہا تھا‪" ،‬میں ایسا انسان ہوں جس پر مکاتبت کا بوجھ ہے۔ لسسوگ اس کسسی طسسرف گویسسا دوڑ‬
‫پڑے اور اس پر کپڑے اور درہم نچھاور کرنے لگے یہاں تک کہ وہ کہنے لگسسا‪" ،‬بسسس کسسافی ہے۔"‬
‫اب وہ اپنے مالکوں کی طرف گیا اور انہیں مکاتبت کی رقم ادا کی۔ اس کسے بعسد ب ھی اس‬
‫کے پاس ‪ 300‬درہم بچ گئے۔ وہ سیدنا ابوموسی رضی اللہ عنہ کے پسساس آیسسا اور ان س سے اس‬
‫رقم کے بارے میں پوچھا۔ آپ نے فرمایا کہ اسے اپنے جیسے اور مکاتبوں کو دے دو۔‬

‫ل ‪ :‬حدث َنا الربيع بن صبيح ‪ ،‬ع َن يزي سد ب س َ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن ع َب ْسدِ‬
‫ّ َ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن أب َسسا َ‬
‫َ‬
‫ن ُ‬
‫ن ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ص َسب َي ِْح ب ْس ِ‬
‫ْ َ ِ َ ْ ِ‬
‫ّ ِ ُ ْ ُ َ ِ ٍ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه‪،‬‬
‫ح ّ‬
‫مكسات َب ِهِ ‪ ،‬فَ َ‬
‫س َ‬
‫اللهِ ‪ :‬أ ّ‬
‫مكسسات َب َت َ ُ‬
‫ه فَسأّدى ُ‬
‫معُسسوا لس ُ‬
‫ج َ‬
‫س ع َلسسى ُ‬
‫ث الّنا َ‬
‫ن ع َب ْد َ اللهِ ب ْ َ‬
‫ن ع َّبا ٍ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‪) .‬مصنف ابن ابی شيبة‪ ،‬حديث ‪(21943‬‬
‫ضل ٌ‬
‫وَب َ ِ‬
‫ةف َ‬
‫ت فَ ْ‬
‫جعَلَها ع َب ْد ُ اللهِ ِفي ال ُ‬
‫قي َ ْ‬
‫مكات ِِبي َ‬
‫سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما لوگسسوں کسسو مکسساتبت کسسی ترغیسسب دلیسسا کرت سے ت ھے۔‬
‫)غلم( ان کے پاس اکٹھے ہو کر آیا کرتے اور وہ ان کی مکسساتبت کسسی رقسسم ادا کسسر دیسسا کرت سے‬
‫تھے۔ ان کے پاس جو بھی مال باقی بچتا‪ ،‬وہ اسے مکاتبوں کی مدد پر ہی صسسرف کیسسا کرت سے‬
‫تھے۔‬

‫ایک طرف تو یہ معاملہ تھا کہ لوگ مکاتبین کی مدد کیا کرتے تھے اور دوسری طرف‬
‫مالکان بھی متعدد مرتبہ مکاتبوں کی رقم حیلے بہانے سے چھوڑ دیا کرتے تھے‪:‬‬
‫فقيه أ َنبأ َنا محمد ب َ‬
‫خبرنا أ َبو ع َبد الل ّه ال ْحاف ُ َ َ َ‬
‫َ‬
‫حد ّث ََنا‬
‫َ ِ‬
‫ِ‬
‫ْ ِ‬
‫ن ُزهَي ْرٍ َ‬
‫نأ ْ‬
‫أ ْ ََ َ ُ‬
‫ح َ‬
‫ظ أن ْب َأَنا أُبو ال ْوَِليد ِ ال ْ َ ِ ُ ْ َ َ ُ َ ّ ُ ْ ُ‬
‫مد َ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫شم ٍ ح َقا َ‬
‫س ْ‬
‫ن َ‬
‫ح سد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ها ِ‬
‫كي سعٌ‬
‫حد ّث ََنا أب ُسسو ب َك ْسرٍ قَسسال َ َ‬
‫ن َ‬
‫فَيا َ‬
‫حد ّث ََنا ال ْ َ‬
‫ل وَ َ‬
‫ن ُ‬
‫ح َ‬
‫ن بْ ُ‬
‫س ُ‬
‫ع َب ْد ُ الل ّهِ ب ْ ُ‬
‫ن َقا َ‬
‫جسساءَ‬
‫جع ْ َ‬
‫ن ِ‬
‫ه فَ َ‬
‫ل ‪ :‬ك َسسات َ َ‬
‫مهَْرا َ‬
‫ن ب ُْرَقا َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫َ‬
‫مسسا ل َس ُ‬
‫م سَر غ ُل َ ً‬
‫ن عُ َ‬
‫مي ْ ُ‬
‫ن َ‬
‫ب اب ْس ُ‬
‫مو ِ‬
‫ن عَ ْ‬
‫فُر ب ْ ُ‬
‫ن بْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫أ‬
‫د‬
‫س‬
‫ري‬
‫ت‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫سا‬
‫س‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ف‬
‫ل‪.‬‬
‫س‬
‫م‬
‫ع‬
‫أ‬
‫و‬
‫ل‬
‫أ‬
‫س‬
‫س‬
‫أ‬
‫ت‬
‫س‬
‫ن‬
‫ك‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫سا‬
‫س‬
‫ق‬
‫ذا؟‬
‫س‬
‫ه‬
‫ن‬
‫س‬
‫ي‬
‫أ‬
‫ن‬
‫م‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ف‬
‫ل‬
‫ح‬
‫ن‬
‫حي‬
‫ه‬
‫م‬
‫ج‬
‫ن‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫بِ َ ْ ِ ِ‬
‫ُ ِ ُ ْ‬
‫َ َ‬
‫ْ‬
‫َ َ‬
‫ْ ُ‬
‫ِ ْ ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م َ‬
‫حّر وَل َ‬
‫سا َ‬
‫ك‪) .‬سسنن الکسبری بيهقسى‪ ،‬كتساب المکساتب‪،‬‬
‫ك نَ ْ‬
‫ت ُ‬
‫مِنى أوْ َ‬
‫ج ُ‬
‫س أن ْ َ‬
‫ت ُط ْعِ َ‬
‫خ الّنا ِ‬
‫حديث ‪(21666‬‬
‫سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما نے اپنے ایک غلم کے ساتھ مکاتبت کی۔ وہ ادائیگی کے وقسست‬
‫اپنی قسط لے کر ان کے پاس آیا تو انہوں نے پوچھا‪" ،‬یہ رقم کہاں سے لئے؟" وہ بول‪" ،‬کچسسھ‬
‫کام کر کے اور کچھ لوگوں سے مانگ کر لیا ہوں۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬کیا تم مجھے لوگوں کی‬
‫میل کھلنا چاہتے ہو۔ جاؤ تم آزاد ہو اور تمہاری قسط بھی تمہاری ہی ہے۔"‬

‫‪67‬‬

‫حکومت کے اقتصادی نظام )‪ (Fiscal System‬میں حکومت کا باقاعسدہ ایسسک خسرچ یسہ‬
‫مقرر کیا گیا کہ وہ غلم خرید کر آزاد کرے یا پھر مکسساتبین کسسی مسسدد کسسرے۔ اس کسسی‬
‫تفصیل ہم آگے چل کر بیان کریں گے۔‬

‫مکاتب کا قانونی اسٹیٹس‬
‫احادیث میں مکاتبت کے حقوق و فرائض کا جو ذکر آیا ہے‪ ،‬اس سے ی سہ معلسسوم ہوتسسا‬
‫ہے کہ مکاتبت کا معاہدہ ہو جانے ک سے بعسسد مکسساتب کسسا اسسسٹیٹس"آزاد" اور "غلم" ک سے‬
‫درمیان ہو جایا کرتا تھا۔ مالک کے لئے لزم ہوا کرتا تھا کہ وہ اسے کام کر ک سے کمسسانے‬
‫کی اجازت دے تاکہ وہ ادائیگی کر کے مکمل آزاد ہو سکے۔ امہات المومنین کو خاص‬
‫طور پر پردہ کرنے کا جو حکم قرآن میں دیسسا گیسسا ت ھا‪ ،‬غلم اس س سے مسسستثنی ت ھے‬
‫لیکن مکاتبت کی صورت میں انہیں مکاتب سے پردہ کرنا ضروری تھا۔‬
‫حدثنا سعيد بن عبد الرحمن قال حدثنا سفيان بن عيينة عن الزهري عن نبهان مولى‬
‫أم سلمة عن أم سلمة قالت قال رسول اللسه صسلى اللسه عليسه وسسلم إذا كسان عنسد‬
‫مكاتب إحداكن ما يؤدي فلتحتجب منه قسسال أبسسو عيسسسى هسسذا حسسديث حسسسن صسسحيح‪.‬‬
‫)ترمذی‪ ،‬کتاب البيوع‪ ،‬حديث ‪(1261‬‬
‫سیدہ ام سلمہ رضی اللہ عنہا )جنہوں نے اپنے غلم سے مکاتبت کسسر لسسی ت ھی( ک ہتی ہیسسں ک سہ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬جب تم میں کوئی مکاتبت کرے اور اس نسے‬
‫پوری ادائیگی نہ بھی کی ہو تب بھی اس سے حجاب کرو۔"‬

‫حدثنا هارون بن عبد الله البزار حدثنا يزيد بسسن هسسارون أخبرنسسا حمسساد بسسن سسسلمة عسسن‬
‫أيوب عن عكرمة عن بن عباس عسن النسسبي صسلى اللسه عليسسه وسسلم قسال إذا أصسساب‬
‫المكاتب حدا أو ميراثا ورث بحساب ما عتق منه وقال النبي صلى اللسسه عليسسه وسسسلم‬
‫يؤدي المكاتب بحصة ما أدى دية حر وما بقي دية عبد۔ )ترمذی‪ ،‬کتاب البيوع‪ ،‬حسسديث‬
‫‪ ،1259‬مستدرک حاکم‪(2866-2865 ،‬‬
‫ابن عباس رضی اللہ عنہما روایت کرتے ہیں کسہ رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬اگر مکاتب کو )کسی جرم میں( سزا دی جائے یا اسے )مالسسک ک سے فسسوت ہو جسسانے‬
‫کی صورت میں اس کے( وارثوں کے حوالے کیا جائے تو ایسا کرتے ہوئے اس کسسا معسساملہ اس‬
‫کی آزادی کے تناسب سے کیا جائے۔ آپ نسے فرمایسا‪) " ،‬اگسر مکساتب کسو کسسی حسادثے میسں‬
‫نقصان پہنچا ہو تو( اس کی دیت کی ادائیگی اس حساب سے کی جائے گی کہ اس نے جتنسے‬
‫)فیصد مکاتبت کی رقسسم( ادا کسسی ہو‪ ،‬اسسے اتنسے )فیصسسد( آزاد سسسمجھا جسسائے گسسا اور جتنسے‬
‫)فیصد( باقی ہو‪ ،‬غلم سمجھا جائے گا۔‬

‫مکاتب کے حقوق و فرائض کے بارے میں اگسسر تمسسام روایسسات کسا جسائزہ لیسسا جسسائے تسسو‬
‫معلوم ہوتا ہے کہ بسالعموم مکساتب کسسو اکسثر حقسوق وہ دیسے گئے ہیسں جسو کسسی آزاد‬
‫شخص کو حاصل تھے لیکن اس پر زکوۃ‪ ،‬حج‪ ،‬جہاد اور حکومتی جرمسسانے وغیسسرہ کسے‬
‫معاملے میں وہ ذمہ داریاں عائد نہیں کی گئیں جسسو ک سہ آزاد افسسراد پسسر عسسائد کسسی گئی‬
‫تھیں۔‬
‫حدثنا عبد الباقي بن قانع وعبد الصمد بن علي قال نا الفضل بن العباس الصواف ثنا‬
‫يحيى بن غيلن ثنا عبد الله بن بزيع عن بن جريج عن أبي الزبير عن جسابر قسال قسال‬
‫رسسسول اللسسه صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم ليسسس فسسي مسسال المكسساتب زكسساة حسستى يعتسسق‪.‬‬
‫)دارقطنى‪ ،‬سنن‪ ،‬كتاب الزكوة(‬
‫سیدنا جابر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم نسے فرمایسسا‪،‬‬
‫"مکاتب کے مال میں کوئی زکوۃ نہیں ہے جب تک وہ مکمل آزاد نہ ہو جائے۔"‬

‫‪68‬‬

‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم میں سے بعض تسسو اس بسسات ک سے قسسائل ت ھے کسہ مکسساتبت‬
‫کرتے ہی غلم آزاد ہو جاتا ہے اور کی حیثیت سابقہ مالک کے مقسسروض کسسی سسسی ہو‬
‫جاتی ہے اور بعض اسے ادائیگی کے تناسب سے آزاد قرار دیا کرتے تھے‪:‬‬
‫عند ابن عباس فإنه يعتق بنفس العقد وهو غريم المولى بما عليسسه مسسن بسسدل الكتابسسة‬
‫وعند علي رضي الله تعسالى عنسه يعتسق بقسسدر مسا أدى۔ )عينسى‪ ،‬عمسدة القسسارى شسسرح‬
‫البخارى(‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کا نقطہ نظر یہ ہے کہ مکاتب معاہدہ کرتسے ہی آزاد ہو جاتسا‬
‫ہے۔ اب وہ اپنے سابقہ مالک کا مقروض ہے کیونکہ اس پر مکاتبت کی رقم کسسی ادائیگسسی لزم‬
‫ہے۔ سیدنا علی رضی اللہ عنہ کا نقطہ نظر یہ ہے کہ وہ جتنسسی رقسسم ادا کسسر دے‪ ،‬اسسسی تناسسسب‬
‫سے آزاد ہو جاتا ہے۔‬

‫عدم ادائیگی ک ے باعث مکاتب کا قانونی تحفظ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے تو یہ قانون بنا دیا ت ھا کسہ اگسسر مکسساتب نصسسف رقسسم کسسی‬
‫ادائیگی کر چکا ہو اور اس کے بعد وہ باقی رقم ادا نہ بھی کر سسسکے تسسب ب ھی اسسے‬
‫غلمی کی طرف نہ لوٹایا جائے گا۔‬
‫حدث َنا اب َ‬
‫ن‬
‫ن ال ْ َ‬
‫سسم ِ ‪َ ،‬‬
‫سسُعود ِيّ ‪َ ،‬‬
‫كيسعٌ ‪َ ،‬‬
‫قا ِ‬
‫حسد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن َ‬
‫ن أِبي َزائ ِد َة َ وَ َ‬
‫م ْ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫عس ْ‬
‫َ ّ َ ْ ُ‬
‫جسساب ِرِ ب ْس ِ‬
‫عس ِ‬
‫عس ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ل ‪َ :‬قا َ‬
‫مَرة َ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ف فَل َرد ّ ع َلي ْسهِ فِسسي‬
‫صس َ‬
‫م ت ُكات ُِبو َ‬
‫َ‬
‫ن ُ‬
‫مُر ‪ :‬إن ّك ْ‬
‫ل عُ َ‬
‫س ُ‬
‫ن ‪ ،‬فَإ َِذا أّدى الن ّ ْ‬
‫مكات َِبي َ‬
‫ق‪) .‬مصنف ابن ابی شيبة؛ حديث ‪(20960‬‬
‫الّر ّ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا‪" ،‬تم لوگ مکاتبت کرتے ہو‪ ،‬جسسب مکساتب آد ھی رقسسم ادا‬
‫کر دے تو پھر اسے غلمی کی طرف نہ لوٹایا جائے گا۔‬
‫یہی بات سیدنا حسن بصری رحمۃ اللہ علیہ فرمایا کرتے تھے کہ نصف رقم کسسی ادائیگسسی ک سے‬
‫بعد مکاتب آزاد ہو جاتا ہے اور اس کی حیثیت ایک مقروض شخص کی ہو جایسسا کرتسسی ہے۔‬
‫)مسند ابن الجعد(‬

‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم عام طور پر اس بات کو پسند نہیں کرتے تھے کہ مکسساتب‬
‫کا مالک کسی اور شخص سے رقم لے کر مکسساتب کسسی بقیسہ اقسسساط کسسو کسسسی اور‬
‫شخص کی طرف منتقل کر دے۔ ہاں اگر وہ مکاتب خود اس کسسی اجسسازت دے دے تسسو‬
‫اسے منتقل کیا جا سکتا ہے۔‬
‫َ‬
‫ن عَ َ‬
‫م ْ َ‬
‫ه َ‬
‫حا ُ‬
‫ن‬
‫طساٍء ‪َ ،‬‬
‫جَري ٍْج ‪َ ،‬‬
‫كسا َ‬
‫ن ُ‬
‫ض ّ‬
‫حد ّث ََنا ال ّ‬
‫َ‬
‫م ْ‬
‫سسُعودٍ ‪ :‬أّنس ُ‬
‫ن َ‬
‫ن َ‬
‫عس ْ‬
‫ك بْ ُ‬
‫ن اْبس ِ‬
‫عس ِ‬
‫ن اب ْ ِ‬
‫خلدٍ ‪ ،‬ع َ ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ب‪) .‬مصنف ابن ابی شيبة؛ حديث ‪(23054‬‬
‫ي َكَره ُ ب َي ْعَ ال ُ‬
‫مكات َ ِ‬
‫سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ مکاتب کے منتقسسل کئے جسسانے کسسو سسسخت ناپسسسند کیسسا‬
‫کرتے تھے۔‬

‫سیدنا علی رضی اللہ عنہ نے مکاتب کے بارے میں یہ فیصلہ فرمایسسا ک سہ اگسسر وہ پسسوری‬
‫رقم کی ادائیگی سے پہلے فوت ہو جائے اور اس کسے بچسے ہوں تسسو وہ بچسے آزاد ہی‬
‫قرار پائیں گے۔ )بیہقی‪ ،‬معرفۃ السنن والثار‪ ،‬کتاب المکاتب(‬
‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا یہ معمول تھا کہ اگر مکسساتبین رقسسم ادا کرنسے سسے‬
‫عاجز ادا آ جاتے تو وہ انہیں بالعموم رقم معاف کر کے آزاد کر دیا کرتے تھے۔‬
‫خبرنا أ َبو بك ْر بن ال ْحسن وأ َبو زك َريا ب َ‬
‫خبرنا أ َبو بك ْر ب َ‬
‫َ‬
‫حسد ّث ََنا أ َب ُسسو‬
‫حاقَ َقال َ َ‬
‫س َ‬
‫ن أِبى إ ِ ْ‬
‫َ َ ِ َ ُ َ ِّ ْ ُ‬
‫نأ ْ ََ َ ُ َ َِ ْ ُ‬
‫أ ْ ََ َ ُ َ ِ ْ ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ب‬
‫ن ي َعْ ُ‬
‫ن ع َب ْسد ِ ال ْ َ‬
‫م َ‬
‫قو َ‬
‫م َ‬
‫ح ّ‬
‫ب أن ْب َأَنا ُ‬
‫ح ّ‬
‫س‪ُ :‬‬
‫ن وَهْ س ٍ‬
‫حك َسم ِ أن ْب َأن َسسا اب ْس ُ‬
‫مد ُ ب ْ ُ‬
‫مد ُ ب ْ ُ‬
‫ن ع َب ْد ِ اللهِ ب ْ ِ‬
‫ا َلعَّبا ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ن‬
‫أ ْ‬
‫هأ ّ‬
‫ن أَباه ُ َ‬
‫مَر ‪ :‬أ ّ‬
‫م َ‬
‫ح سد ّث َ ُ‬
‫ن عُ َ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫خب ََرِنى ع ُ َ‬
‫ن ع َب ْسد َ الل ّسهِ ب ْس َ‬
‫مُر ب ْ ُ‬
‫ن ع َ َب ْد ِ اللهِ َب ْ ِ‬
‫ن َزي ْد ِ ب ْ ِ‬
‫مد ِ ب ْ ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫مس ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ل ع َل َسسى‬
‫ع‬
‫ي‬
‫ن‬
‫سا‬
‫س‬
‫ك‬
‫ف‬
‫ة‬
‫ف‬
‫كو‬
‫ل‬
‫ا‬
‫لى‬
‫إ‬
‫ج‬
‫ر‬
‫خ‬
‫ف‬
‫فا‬
‫ً‬
‫ل‬
‫أ‬
‫ن‬
‫عي‬
‫ب‬
‫ر‬
‫أ‬
‫ب‬
‫فا‬
‫ر‬
‫ش‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ل‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ي‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ما‬
‫ل‬
‫غ‬
‫ب‬
‫ت‬
‫كا‬
‫ر‬
‫م‬
‫ِ‬
‫ً ُ ُ‬
‫َ َ‬
‫َ َْ َ‬
‫ُ‬
‫ِ ْ َِ َ‬
‫ْ‬
‫عُ َ َ‬
‫َ َ َ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قا َ‬
‫ة عَ َ‬
‫ب‬
‫ن فَ َ‬
‫شَر أل ْ ً‬
‫حّتى أّدى َ‬
‫ت َ‬
‫س َ‬
‫ها هَُنا ت ُعَذ ّ ُ‬
‫جُنو ٌ‬
‫م ْ‬
‫سا ٌ‬
‫فا فَ َ‬
‫ه َ‬
‫ُ‬
‫جاَءه ُ إ ِن ْ َ‬
‫م َ‬
‫ت أن ْ َ‬
‫ن أن ْ َ‬
‫ل َ‬
‫خ ْ‬
‫مر ٍ ل َ ُ‬
‫ح ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ه‬
‫لسس‬
‫ل‬
‫قسس‬
‫َ‬
‫ف‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫إ‬
‫ع‬
‫ج‬
‫ر‬
‫ا‬
‫م‬
‫ه‬
‫ُ‬
‫ق‬
‫ت‬
‫ع‬
‫ي‬
‫م‬
‫ث‬
‫ل‬
‫ما‬
‫ش‬
‫و‬
‫نا‬
‫مي‬
‫ي‬
‫ق‬
‫قي‬
‫ر‬
‫ال‬
‫رى‬
‫ت‬
‫ش‬
‫ي‬
‫ر‬
‫م‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ال‬
‫د‬
‫ب‬
‫ع‬
‫و‬
‫ك‬
‫س‬
‫ْ‬
‫ف‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ً‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫نَ َ‬
‫ُ‬
‫ّ‬
‫َ َ‬
‫َ‬
‫ُ َ ْ‬
‫ّ‬
‫َ َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫‪69‬‬

‫َ‬
‫قا َ‬
‫فِتى‬
‫حي َ‬
‫فت ِهِ فَ َ‬
‫حي َ‬
‫صس ِ‬
‫ت وَ َ‬
‫ص ِ‬
‫ن َقسد ْ ع َ َ‬
‫ل َيا أَبا ع َْبسد ِ الّر ْ‬
‫ت فَ َ‬
‫قَد ْ ع َ َ‬
‫جسْز ُ‬
‫ح َ‬
‫جْز ُ‬
‫هسذ ِهِ َ‬
‫جاَء إ ِل َي ْهِ ب ِ َ‬
‫مس ِ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫مسَر قسا َ‬
‫قا َ‬
‫ل‬
‫ها ف َ‬
‫حَها ف َ‬
‫حا َ‬
‫ن ِ‬
‫فا َ‬
‫م َ‬
‫حَها إ ِ ْ‬
‫م ُ‬
‫م ُ‬
‫ن عُ َ‬
‫ض ْ‬
‫تف َ‬
‫شئ َ‬
‫نا ْ‬
‫َفا ْ‬
‫ت ع َي َْنسا ع َْبسد ِ اللسهِ ْبس َ ِ‬
‫ل ل وَلك ِ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫س ْ َ‬
‫ح َ‬
‫ح َ‬
‫ن َقا َ‬
‫ى َقا َ‬
‫حّر َقا َ‬
‫ه‬
‫ح ِ‬
‫صل َ َ‬
‫ما ُ‬
‫هأ ْ‬
‫صل َ َ‬
‫ت ُ‬
‫اذ ْهَ ْ‬
‫ك الّلسس ُ‬
‫ل هُ َ‬
‫ك الل ّ ُ‬
‫ب فَأن ْ َ‬
‫ل‪:‬أ ْ‬
‫لأ ْ‬
‫حّرا ِ‬
‫ن َإ ِلى اْبن ّ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ى وَل َد َىّ َقا َ‬
‫د‪) .‬بیہقسسی‪،‬‬
‫م ْ‬
‫ن فَأع ْت َ َ‬
‫م َ‬
‫قعَس ٍ‬
‫ج ِ‬
‫ح ِ‬
‫م َ‬
‫ما ُ‬
‫أ ْ‬
‫م َ‬
‫ميعًسسا فِسسى َ‬
‫ست َهُ ْ‬
‫خ ْ‬
‫قه ُ ْ‬
‫ل هُ َ‬
‫ن إ َِلى أ ّ‬
‫حّرَتا ِ‬
‫س ْ‬
‫م ْ‬
‫معرفۃ السنن والثار‪ ،‬کتاب المکاتب(‬

‫زید بن عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہم بیان کرتے ہیں کہ ان کے والد عبداللہ بن عمر نے ایسسک‬
‫غلم‪ ،‬جس کا نام شرف تھا‪ ،‬سے ‪ 40,000‬درہم پر مکاتبت کی۔ وہ کوفہ کی جانب نکل گیسسا‬
‫اور وہاں وہ اسفالٹ کا کام کرنے لگا یہاں تک کہ اس نے ‪ 15,000‬درہم ادا کر دیے۔ اس کسسے‬
‫پاس ایک شخص آیا اور کہنے لگا‪" ،‬تم تو پاگل ہو‪ ،‬تم ی ہاں سسخت محنست کسر ر ہے ہو جبکسہ‬
‫عبداللہ بن عمر تو ادھر ادھر سے غلم خریدتے ہیں اور اسسے آزاد کسر دیتسے ہیسں۔ تسم ان کسے‬
‫پاس جاؤ اور کہو‪ ،‬میں رقم ادا کرنے سے عاجز آ گیا ہوں۔"‬
‫)اب وہ واپس ان کے پاس آیا اور اس کے طلب کرنے پر( اس کے پاس اس کی مکاتبت کا‬
‫معاہدہ لیا گیا۔ وہ کہنے لگا‪" ،‬اے ابو عبدالرح ٰمن! میں رقم ادا کرنے سے عاجز آ گیسسا ہوں۔ ی سہ‬
‫میرا معاہدہ ہے‪ ،‬اسے مٹا دیجیے۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬نہیں‪ ،‬ہاں تسسم ہی غلم رہنسسا چسساہو تسسو میسسں‬
‫اسے مٹا دوں گا۔" جب معاہدہ مٹایا گیا تو اس کی آنکھوں سے آنسو بہہ نکلے۔ سیدنا عبسسداللہ‬
‫بن عمر رضی اللہ عنہما نے فرمایا‪" ،‬جاؤ‪ ،‬تم آزاد ہو۔" وہ کہنے لگا‪" ،‬اللہ آپ کے سسساتھ بھلئی‬
‫کرے‪ ،‬میرے دونوں بیٹوں پر بھی احسان کیجیے۔" فرمایسسا‪" ،‬وہ دونسسوں ب ھی آزاد ہیسسں۔" کہن سے‬
‫لگا‪" ،‬میرے دونوں بچوں کی ماؤں پر بھی احسان کیجیے۔" آپ نے فرمایسسا‪" ،‬وہ دونسسوں ب ھی‬
‫آزاد ہیں۔" اس طرح آپ نے بیٹھے بیٹھے وہیں ان پانچوں کو آزاد کر دیا۔‬

‫متعدد مالکوں ک ے مشترک غلم کی مکاتبت‬
‫بسا اوقات ایسا بھی ہوتا تھا کہ ایک شخص متعدد مالکوں کا غلم ہوتا تھا۔ اس کسسی‬
‫صورت ایسی ہی تھی جیسا کہ اگسسر کسسوئی کسسسی پارٹنرشسسپ کمپنسسی کسسا ملزم ہو۔‬
‫ایسی صورت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے حکم دیا کہ اگر کوئی ایک‬
‫پارٹنر غلم میں اپنے حصے کو آزاد کرے تو باقی پارٹنر بھی اپنے اپنے حصوں کو آزاد‬
‫کر دیں۔ اگر وہ ایسا کرنے پر تیار نہ ہوں تو غلم خود بخود مکاتب کا درجہ اختیار کر‬
‫جائے گا۔ وہ کما کر اپنے باقی مالکان کو ادائیگی کرے گا اور اس معسساملے میسسں اس‬
‫پر سختی نہ کی جائے گی۔‬
‫حدثنا بشر بن محمد‪ :‬أخبرنا عبد الله‪ :‬أخبرنا سعيد بن أبي عروبسسة‪ ،‬عسسن قتسسادة‪ ،‬عسسن‬
‫النضر بن أنس‪ ،‬عن بشير بن نهيك‪ ،‬عن أبي هريرة رضي الله عنه‪ ،‬عن النبي صسسلى‬
‫الله عليه وسلم قال‪) :‬من أعتق شقيصا من مملوكه فعليه خلصه في ماله‪ ،‬فإن لسسم‬
‫يكن له مال‪ ،‬قوم المملوك قيمة عدل‪ ،‬ثم استسسسعي غيسسر مشسسقوق عليسسه(‪) .‬بخسساری‪،‬‬
‫کتاب الشرکة‪ ،‬حديث ‪(2492‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے فرمایسسا‪،‬‬
‫"اگر کسی نے غلم میں سے اپنے حصے کو آزاد کر دیا تو اس پر لزم ہے کہ وہ اپنے مال میں‬
‫سے اس غلم کو پورا آزاد کروائے۔ اگر اس کے پاس مسسال ن سہ ہو تسسو اس غلم کسسی مناسسسب‬
‫قیمت لگوائی جائے اور اسے سے اسے کمانے کو کہا جائے گا اور اس پر سختی نہ کسسی جسسائے‬
‫گی۔‬

‫قانون مکاتبت ک ے اثرات‬
‫مکاتبت کا یسہ قسسانون ایسسک انقلبسسی قسسانون ت ھا۔ غلمسسوں کسسی آزادی کسے دیگسسر تمسسام‬
‫اقدامات کا تعلق تو ان کے مالکان یا حکسسومت س سے ت ھا لیکسسن مکسساتبت وہ سسسماجی‬
‫ادارہ تھا جس کی بدولت غلم خود اپنی آزادی کسسی تاریسسخ رقسسم کسسر سسسکتے ت ھے۔ یسہ‬
‫آزادی خود ان کی اپنی خسواہش کسی مر ہون منست ت ھی۔ اس کسے لئے حکسومت اور‬
‫مخیر حضرات ہمہ دم ان کی مدد کے لئے تیار تھے۔ اب اگر کوئی کمی بسساقی رہ گئی‬
‫‪70‬‬

‫تھی تو وہ یہی تھی کہ غلم خود آزادی کا طالب نہ ہو ورنہ اسسے آزاد کرنسے کسے تمسسام‬
‫وسائل مہیا کر دیے گئے تھے۔ اس کے بعد وہی لوگ غلمسسی میسسں بسساقی رہ جسساتے جسسو‬
‫خود غلم رہنا چاہتے تھے۔‬
‫اس اقدام کا نتیجہ بہت ہی مثبت نکل۔ غلموں میں آزادی خریدنے کی زبردسسست‬
‫تحریک پیدا ہوئی۔ اس کی وجہ یہ بھی تھی کہ یہ آزادی حاصل کرنسے کسسا ایسسک بسساعزت‬
‫طریقہ تھا جس میں مالک کا غلم پر کوئی احسان بھی قائم نہ ہوتا تھا اور غلم کی‬
‫عزت نفس مجروح کئے بغیر اسے آزادی مل جایسسا کرتسسی ت ھی۔ مکسساتبت کسے ذریعسے‬
‫مالک کو بھی اپنی وہ رقم واپس مل جایا کرتی تھی جسو اس نسے غلم کسی خسدمات‬
‫کو خریدنے پر صرف کی تھی۔‬
‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بے شسسمار مکسساتبین کسسا ذکسسر اسسسماء الرجسسال کسسی‬
‫کتابوں میں ملتا ہے۔ یہ حضرات نہ صرف ان سے مکاتبت کر لیا کرتسے ت ھے بلکسہ اس‬
‫میں سے جس قدر رقم کم کر سکتے کر دیتے اور آزادی کے وقسست انہیسسں اپن سے مسسال‬
‫میں سے بھی بہت کچھ دے دل کر بھیجا کرتے تھے۔‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے اپنے ایک غلم ابوامیہ سے مکاتبت کسسی اور جسسب ان‬
‫کی آزادی کا وقت آیا تو سیدنا عمر کے پاس کچھ نہ تھا۔ انہوں نسے اپنسسی بیسسٹی سسسیدہ‬
‫حفصہ رضی اللہ عنہا سے دو سو درہم ادھار لے کر ابو امیہ کو دیے۔ سیدنا ابسسو ایسسوب‬
‫انصاری رضی اللہ عنہ نے اپنے ایک غلم سے مکسساتبت کسسی اور پ ھر اس پسسر خسسود ہی‬
‫شرمندگی کا اظہار کرتے ہوئے انہیں پوری رقم معاف کر دی۔ )طبقات ابن سعد اور‬
‫سنن الکبری( سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما مکاتبت کرت سے تسسو اس ک سے آخسسر میسسں‬
‫رقم معاف کر دیا کرتے تھے۔‬
‫بعد کے ادوار میں مکاتبت کا ادارہ اتنی ترقی کر گیسا کسہ قسانونی مسساہرین کسسو ان‬
‫میں باقاعدہ الگ سے مکاتبت کے ابواب قائم کر کے اس سے متعلسسق قسسانون سسسازی‬
‫کرنا پڑی۔‬

‫مکاتبت کی انشورنس کا نظام‬
‫موطاء امام مالک کے مطالعے سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کے دور میں مکاتبت کا ادارہ‬
‫اتنی ترقی کر چکا تھا کہ غلم اجتمساعی طسسور پسسر ب ھی مکسساتبت کیسسا کرتسے ت ھے۔ یسہ‬
‫مکاتبت کی انشورنس کا نظام تھا۔ اس میں یہ معاملہ طے کیا جاتا کہ چند غلم مسسل‬
‫کر اپنے مالکوں سے مکاتبت کریں گے۔ اگر بیماری یا کسی اور وجہ سے کسسوئی غلم‬
‫اپنی ادائیگی نہ کر سکے تو اس کے دوسرے ساتھی اس کی ادائیگی کریں گے۔‬

‫حکومتی سطح پر غلموں کی آزادی‬
‫ک ے اقدامات‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غلموں کو محض آزاد کرنے اور آزاد ہونے ہی‬
‫کی ترغیب نہ دلئی بلکہ آپ نے مسسدینہ میسسں حکسسومت قسسائم کرنسے ک سے بعسسد حکومسستی‬
‫سطح پر اس کا اہتمام بھی فرمایا۔ مدینہ کی اس ریاست کسسی اقتصسسادی پالیسسسی )‬
‫‪ (Fiscal Policy‬میں غلموں کی آزادی کو ایک سرکاری خرچ کسسی حیسسثیت دی گئی۔‬
‫ریاست کی آمدنی کا ذریعہ زکوۃ تھی جسے قرآن مجید میں صدقہ کسسا نسسام ب ھی دیسسا‬
‫گیا ہے۔‬
‫ب‬
‫مؤ َل ّ َ‬
‫ف َ‬
‫ت ل ِل ْ ُ‬
‫ن َوال َْعا ِ‬
‫سا ِ‬
‫م َ‬
‫فسةِ قُل ُسسوب ُهُ ْ‬
‫ن ع َل َي ْهَسسا َوال ْ ُ‬
‫قَراءِ َوال ْ َ‬
‫صد ََقا ُ‬
‫إ ِن ّ َ‬
‫م وَفِسسي الّرقَسسا ِ‬
‫ما ال ّ‬
‫مِلي َ‬
‫كي ِ‬
‫‪71‬‬

‫سِبي ِ ّ‬
‫م۔ )التوب سة‬
‫ض ً‬
‫ح ِ‬
‫ة ِ‬
‫َوال َْغارِ ِ‬
‫م َ‬
‫ري َ‬
‫ن ال ّ‬
‫ن وَِفي َ‬
‫كيس ٌ‬
‫ه ع َِليس ٌ‬
‫ن الل ّسهِ َوالل ّس ُ‬
‫م ْ‬
‫سِبي ِ‬
‫مي َ‬
‫ل فَ ِ‬
‫ل اللهِ وَا ِب ْ ِ‬
‫‪(9:60‬‬
‫یہ صدقات تو دراصل فقرا‪ ،‬مساکین اور سرکاری ملزموں )کی تنخواہوں( کے لئے ہیسسں‪ ،‬اور‬
‫ان کے لئے جن کی تالیف قلب مقصود ہو۔ یہ غلم آزاد کرنے‪ ،‬قرض داروں کسسی مسسدد کرن سے‪،‬‬
‫اللہ کی راہ میں خرچ کرنے اور مسافروں کی مدد کے لئے ہیں۔ یہ اللسہ کسی طسرف سسے ایسک‬
‫فریضہ ہے اور اللہ علم و حکمت وال ہے۔‬

‫حکومتی سطح پر بھی بہت سے غلموں کو خرید کر آزاد کیا گیا۔ بعض مکاتبوں کسسو‬
‫اپنی رقم کسسی ادائیگسسی کسے لئے ان کسسی مسسدد کسسی گئی۔ اس کسسی ایسسک مثسسال سسسیدنا‬
‫سلمان فارسی رضی اللہ عنہ ہیسسں۔ خلفسساء راشسسدین کسے دور میسسں بیسست المسسال سسے‬
‫غلموں کو خرید خرید کر آزاد کیا جاتا تھا۔ اگر کسی کا کوئی وارث نہ ہوتسسا تسسو اس‬
‫کی چھوڑی ہوئی جائیداد کو بیچ کر اس سے بھی غلم آزاد کئے جسساتے۔ چنسسد مثسسالیں‬
‫پیش خدمت ہیں‪:‬‬
‫طاِء ب ْن أ َِبي َرَباح ‪ :‬أ َ ّ َ‬
‫ن عَ َ‬
‫س َ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫َ‬
‫طا ُ‬
‫م ْ‬
‫ل ‪ :‬حد ّث ََنا ب ِ ْ‬
‫ن ُ‬
‫سل ِم ٍ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫م بْ ُ‬
‫ن طسسارِقَ ب ْس ِ‬
‫ٍ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫قسسا َ‬
‫ل‪:‬‬
‫ق ‪ ،‬فَ َ‬
‫ر‬
‫سا‬
‫س‬
‫ط‬
‫ه‬
‫ل‬
‫و‬
‫س‬
‫م‬
‫سى‬
‫س‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ض‬
‫ر‬
‫س‬
‫ع‬
‫ف‬
‫‪،‬‬
‫مال‬
‫ك‬
‫ر‬
‫ت‬
‫و‬
‫ت‬
‫ما‬
‫ف‬
‫‪،‬‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ما‬
‫ل‬
‫غ‬
‫ق‬
‫ت‬
‫ع‬
‫أ‬
‫قع‬
‫لمر‬
‫ا‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ ْ ُ‬
‫َ‬
‫ً ُ‬
‫َ‬
‫ُ ِ َ‬
‫َ َ َ َ‬
‫ِ ٍ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ب فِسسي ذ َل ِس َ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫م سَر ‪ ،‬فَك َت َس َ‬
‫ست ب َِعائ ِد ٍ ِفيهِ ‪ ،‬فَك ُت ِ َ‬
‫يٌء َ‬
‫جعَلته ل ِلهِ ‪ ،‬فَل ْ‬
‫ب عُ َ‬
‫ك إلسسى ع ُ َ‬
‫م سُر ‪ :‬أ ِ‬
‫ش ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫م ‪َ ،‬قسسا َ‬
‫ما َ‬
‫ه وَإ ِل َفا ْ‬
‫غ‬
‫قا فَأع ْت ِ ُ‬
‫شت ََرْوا ب ِهِ َرِقي ً‬
‫ل ‪ :‬فَب َلسس َ‬
‫ق ‪ ،‬فَإ ِ ْ‬
‫اع ْرِ ُ‬
‫قوهُ ْ‬
‫ن قَب ِل ُ‬
‫ضوا ال َ‬
‫ل ْع َلى طارِ ٍ‬
‫ة عَ َ‬
‫سا‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب المیراث‪ ،‬حدیث ‪(32086‬‬
‫َ‬
‫س َ‬
‫شَر َرأ ً‬
‫م َ‬
‫خ ْ‬
‫طارق بن مرقع نے ایک غلم کو اللہ کی رضا کسے لئے آزاد کیسسا۔ وہ فسسوت ہو گیسسا اور اس نسے‬
‫کچھ مال ترکے میں چھوڑا۔ یہ مال اس کے سابقہ مالک طارق کے پاس پیش کیا گیا۔ وہ کہنسے‬
‫لگے‪" ،‬میں نے تو اسے محض اللہ کی رضا کے لئے آزاد کیا تھا‪ ،‬میں اس میں سے کچھ نہ لوں‬
‫گا۔" یہ بات سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کو لکھ کر بھیجی گئی کہ طارق مال لینے سے انکار کر‬
‫رہے ہیں۔ انہوں نے جواب دیا‪" ،‬اگر وہ قبول کر لیں تو ٹھیک ہے ورنہ اس سسے غلم خریسسد کسسر‬
‫آزاد کرو۔" راوی کہتے ہیں کہ اس مال سے پندرہ غلم آزاد کئے گئے۔‬

‫سیدنا عمر رضی اللسہ عنسہ کسے دور میسسں تسسو عسسرب میسسں موجسسود تمسسام غلمسسوں کسسو‬
‫حکومت کے مال سے خرید کر آزاد کر دیا گیا۔ اس کی تفصیل ہم آگے چل کسسر بیسسان‬
‫کریں گے۔ ز ٰکوۃ ایک حکومتی ٹیکس تھا جو مسلمانوں پر مذہبی طور پر واجسسب کیسسا‬
‫گیا تھا۔ اس معاملے میں تو یہاں تک اجازت دے دی گئی کہ اگر کسسوئی شسسخص اپنسسی‬
‫زکوۃ کی رقم سے خود ہی غلم خرید کر آزاد کر دے تو وہ حکومت کو ادائیگی کرتے‬
‫ہوئے اس رقم کو قابل ادائیگی زکوۃ )‪ (Zakat Liability‬سے منہا کسسر سسسکتا ہے۔ ابسسن‬
‫زنجویۃ نے کتاب الموال میں سیدنا ابن عباس اور حسن بصری کا یہ موقف بیان کیا‬
‫ہے۔‬

‫مذ ہبی بنیادوں پر غلم آزاد کرن ے ک ے‬
‫احکامات‬
‫اللہ تعالی کو چونکہ غلموں کی آزادی سے خاص دلچسپی تھی‪ ،‬اس وجسہ سسے کچسھ‬
‫دینی احکام کی خلف ورزی کی صورت میں بطور کفارہ انہیسسں غلم آزاد کرن سے کسسا‬
‫حکم دیا گیا۔ ان میں قسم توڑنے‪ ،‬ناجائز طریق سے س سے طلق دین سے اور غلطسسی س سے‬
‫کسی کی جان لے لینے کی صورتیں شامل تھیں۔‬

‫قسم توڑن ے کا کفار ہ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن يُ َ‬
‫ل يُ َ‬
‫م‬
‫ن فَك َ ّ‬
‫ما ع َ ّ‬
‫ؤا ِ‬
‫ؤا ِ‬
‫ما َ‬
‫ه إ ِط َْعسسا ُ‬
‫فاَرت ُ ُ‬
‫م الي ْ َ‬
‫قد ْت ُ ْ‬
‫م بِ َ‬
‫خذ ُك ُ ْ‬
‫مان ِك ُ ْ‬
‫ه ِبالل ّغْوِ ِفي أي ْ َ‬
‫م الل ّ ُ‬
‫خذ ُك ُ ْ‬
‫م وَل َك ِ ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫عَ َ‬
‫م‬
‫لس‬
‫ن‬
‫مس‬
‫ف‬
‫ة‬
‫بس‬
‫ق‬
‫ر‬
‫ر‬
‫ريس‬
‫ح‬
‫ت‬
‫و‬
‫أ‬
‫م‬
‫ه‬
‫ت‬
‫و‬
‫س‬
‫ك‬
‫و‬
‫أ‬
‫م‬
‫ك‬
‫لي‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ن‬
‫مو‬
‫ع‬
‫ط‬
‫ت‬
‫ما‬
‫ط‬
‫س‬
‫و‬
‫أ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ن‬
‫كي‬
‫سا‬
‫م‬
‫ة‬
‫ر‬
‫ْ‬
‫ش َ ِ َ َ ِ َ ِ ْ ْ َ ِ َ ُ ِ ُ َ ْ ِ ْ ْ ِ ْ َُُ ْ ْ َ ْ ِ ُ َ َ ٍ َ ْ‬
‫‪72‬‬

‫َ‬
‫م َثلث َةِ أ َّيام ٍ ذ َل ِ َ‬
‫م ۔ )المائدة ‪(5:89‬‬
‫حل َ ْ‬
‫ك كَ ّ‬
‫جد ْ فَ ِ‬
‫م إ َِذا َ‬
‫صَيا ُ‬
‫فت ُ ْ‬
‫مان ِك ُ ْ‬
‫فاَرة ُ أي ْ َ‬
‫يَ ِ‬
‫تم لوگ جو بغیر سوچے سمجھے قسمیں کھا لیتے ہو‪ ،‬ان پر تو اللہ تمہاری گرفت نہ کسسرے گسسا‬
‫مگر جو قسمیں تم جان بوجھ کر کھاتے ہو‪ ،‬ان پر وہ ضرور تم سے مواخذہ کرے گسا۔ )ایسسسی‬
‫قسم توڑنے کا( کفارہ یہ ہے کہ تم دس مساکین کو اوسط درجے کا وہ کھانا کھلؤ جو تم اپنسے‬
‫بال بچوں کو کھلتے ہو یا انہیں لباس فراہم کرو یا پھر غلم آزاد کرو۔ جسے یہ میسر نہ ہو وہ‬
‫تین دن کے روزے رکھے۔ یہ تمہاری قسموں کا کفارہ ہے۔‬

‫ناجائز طریق ے س ے طلق دین ے کا کفار ہ‬
‫ظاهرون من ن ِسائ ِهم ث ُم يعودون ل ِما َقاُلوا فَتحرير رقَبة مسن قَبس َ‬
‫سسسا‬
‫َوال ّ ِ‬
‫لأ ْ‬
‫ما ّ‬
‫ن ي َت َ َ‬
‫ن يُ َ ِ ُ َ ِ ْ َ ِ ْ ّ َ ُ ُ َ َ‬
‫َ ْ ِ ُ َ َ ٍ ِ ْ ْ ِ‬
‫ذي َ‬
‫م ُتوع َ ُ‬
‫خِبيٌر۔ )المجادلة ‪(58:3‬‬
‫ن َ‬
‫مُلو َ‬
‫ظو َ‬
‫ما ت َعْ َ‬
‫ه بِ َ‬
‫ن ب ِهِ َوالل ّ ُ‬
‫ذ َل ِك ُ ْ‬
‫جو لوگ اپنی بیویوں کو ماں قرار دے بیٹھیں اور پھر اپنی کہی ہوئی بسسات سسے رجسسوع کرنسسا‬
‫چاہیں تو ان کے لئے لزم ہے کہ وہ ایک دوسرے کو ہاتھ لگانے سے پہل سے ایسسک غلم آزاد کریسسں۔‬
‫اس سے تمہیں نصیحت کی جاتی ہے اور جو کچھ تم کرتے ہو‪ ،‬اللہ اس سے باخبر ہے۔‬

‫غلطی س ے کسی کو قتل کر دین ے کا کفار ہ‬

‫ً‬
‫ل مؤ ْمنا ً إل ّ َ ً‬
‫كان ل ِمؤ ْم َ‬
‫ن قَت َ َ‬
‫ن يَ ْ‬
‫من سا ً َ‬
‫من َسةٍ‬
‫مؤ ْ ِ‬
‫مؤ ْ ِ‬
‫خط َسأ فَت َ ْ‬
‫نأ ْ‬
‫ري سُر َرقَب َسةٍ ُ‬
‫ل ُ‬
‫خط َأ وَ َ‬
‫وَ َ‬
‫م ْ‬
‫ح ِ‬
‫قت ُ َ َُ ِ ِ‬
‫ما َ َ ُ ِ ٍ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ريسسُر‬
‫م ٌ‬
‫وَد ِي َ ٌ‬
‫مؤ ْ ِ‬
‫ن ِ‬
‫ن فت َ ْ‬
‫ن كا َ‬
‫صد ّقوا فإ ِ ْ‬
‫ة إ ِلى أهْل ِهِ إ ِل أ ْ‬
‫م َ‬
‫م وَهُوَ ُ‬
‫ن قوْم ٍ ع َد ُوّ لك ْ‬
‫سل َ‬
‫ة ُ‬
‫ن يَ ّ‬
‫م ٌ‬
‫م ْ‬
‫ح ِ‬
‫ة إل َسسى أ َ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ري سُر‬
‫ح‬
‫ت‬
‫و‬
‫ه‬
‫س‬
‫ل‬
‫ه‬
‫م‬
‫ل‬
‫س‬
‫س‬
‫م‬
‫ة‬
‫س‬
‫ي‬
‫د‬
‫ف‬
‫ق‬
‫سا‬
‫س‬
‫ث‬
‫مي‬
‫م‬
‫ه‬
‫ن‬
‫ي‬
‫ب‬
‫و‬
‫م‬
‫ك‬
‫ن‬
‫ي‬
‫ب‬
‫م‬
‫و‬
‫ق‬
‫ن‬
‫م‬
‫ن‬
‫كا‬
‫ن‬
‫إ‬
‫و‬
‫ة‬
‫ن‬
‫م‬
‫ؤ‬
‫م‬
‫ة‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫ٌ‬
‫ٌ‬
‫ٌ‬
‫َ ِ ْ ْ ٍ ََْ ْ َََُْ ْ ِ‬
‫َِ‬
‫َرقَب َ ٍ ُ ِ َ ٍ َ ِ ْ‬
‫ِ ََ ْ ِ‬
‫ُ َ َ ِ‬
‫ه ع َِليم سا ً‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫م َ‬
‫ن ت َوْب َس ً‬
‫ة ِ‬
‫جد ْ فَ ِ‬
‫مؤ ْ ِ‬
‫ن اللسهِ وَك َسسا َ‬
‫صَيا ُ‬
‫ن اللس ُ‬
‫ن ُ‬
‫م يَ ِ‬
‫نل ْ‬
‫من َةٍ فَ َ‬
‫َرقَب َةٍ ُ‬
‫مس ْ‬
‫م ْ‬
‫مت َت َسساب ِعَي ْ ِ‬
‫شهَْري ْ ِ‬
‫كيما ً۔ )النساء ‪(4:92‬‬
‫ح ِ‬
‫َ‬

‫کسی مومن کو یہ بات روا نہیں ہے کہ وہ کسی دوسرے مومن کو قتل کرے سوائے اس کے کہ‬
‫غلطی سے ایسا ہو جائے۔ تو جو شخص غلطی سے کسی مسلمان کو قتل کر بیٹھے وہ ایسسک‬
‫مسلمان غلم آزاد کرے اور مقتول کے وارثوں کو قانون کے مطسسابق دیسست ادا کسسرے‪ ،‬سسسوائے‬
‫اس کے کہ وہ معاف کر دیں۔‬
‫اگر وہ مقتول تمہاری دشمن قوم کا فرد ہے مگر مسسسلمان ہے تسسو اس کسسا کفسسارہ ب ھی ایسسک‬
‫مسلمان غلم کو آزاد کرنا ہے۔‬
‫اگر وہ کسی ایسی قوم سے تعلق رکھتا ہو جس کے اور تمہارے مابین معاہدہ ہے تو پھر ب ھی‬
‫قانون کے مطابق اس کے وارثوں کو دیت کی ادائیگی اور مسلمان غلم آزاد کرنا ضسسروری‬
‫ہے۔ جس کے پاس غلم نہ ہوں‪ ،‬اس کے لئے لزم ہے کہ وہ اللہ سے توبہ کرتے ہہہوئے دو مسساہ ک سے‬
‫مسلسل روزے رکھے اور اللہ علم و حکمت وال ہے۔‬

‫روز ہ توڑن ے کا کفار ہ‬
‫ایک حدیث کے مطابق رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم نسے روزہ تسسوڑنے پسسر ب ھی‬
‫یہی کفارہ عائد کیا۔‬
‫حدثنا موسى‪ :‬حدثنا إبراهيم‪ :‬حدثنا ابن شهاب‪ ،‬عسن حميسسد بسن عبسد الرحمسسن‪ :‬أن أبسسا‬
‫هريرة رضي الله عنه قال‪ :‬أتى رجل النبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم فقسسال‪ :‬هلكسست‪،‬‬
‫وقعت على أهلي في رمضسسان‪ ،‬قسسال‪) :‬أعتسسق رقبسسة(‪ .‬قسسال‪ :‬ليسسس لسسي‪ ،‬قسسال‪) :‬فصسسم‬
‫شهرين متتابعين(‪ .‬قال‪ :‬ل أستطيع‪ ،‬قال‪) :‬فأطعم ستين مسكينًا(‪ .‬قال‪ :‬ل أجد‪ ،‬فسأتي‬
‫بعرق فيه تمر ‪ -‬قال إبراهيم‪ :‬العرق المكتل ‪ -‬فقال‪) :‬أين السائل‪ ،‬تصدق بها(‪ .‬قسسال‪:‬‬
‫على أفقر مني‪ ،‬والله ما بين لبتيها أهل بيت أفقر منا‪ ،‬فضحك النبي صلى الله عليسسه‬
‫وسلم حتى بدت نواجذه‪ ،‬قال‪) :‬فأنتم إذًا(‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب الدب‪ ،‬حديث ‪(6087‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ ایک شخص رسول اللہ صلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ‬
‫وسلم کے پاس آیا اور کہنے لگا‪" ،‬میں ہلک ہو گیا۔ میں نے روزے کی حالت میسسں اپنسی بیسسوی‬
‫سے ازدواجی تعلقات قائم کر لئے ہیں۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬غلم آزاد کرو۔" وہ کہنے لگا‪" ،‬میرے‬
‫‪73‬‬

‫پاس کوئی غلم نہیں ہے۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬دو مہین سے ک سے لگاتسسار روزے رک ھو۔" وہ کہن سے لگسسا‪،‬‬
‫"مجھ میں اتنی طاقت نہیں ہے۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬پ ھر سسساٹھ مسسسکینوں کسسو کھانسسا کھلؤ۔" وہ‬
‫بول‪" ،‬میرے پاس یہ بھی تو نہیں ہے۔"‬
‫اسی اثنا میں آپ کے پاس کھجوروں کو ایک ٹوکرا لیا گیا۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬وہ سائل ک ہاں‬
‫ہے؟" اسے ٹوکرا دے کر ارشاد فرمایا‪" ،‬اسی کو صدقہ کر دو۔" وہ بول‪" ،‬مجھ س سے زیسسادہ اور‬
‫کون غریب ہو گا۔ اللہ کی قسم اس شہر کے دونوں کناروں کے درمیسان میسرے خانسدان سسے‬
‫زیادہ غریب تو کوئی ہے نہیں۔" یہ سن کر نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ہنس پڑے اور آپ ک سے‬
‫دانت ظاہر ہو گئے۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬چلو تم ہی اسے لے جاؤ۔"‬

‫سورج گر ہن پر غلموں کی آزادی‬
‫اس کے علوہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سورج گرہن کے موقع پسسر ب ھی‬
‫غلم آزاد کرنے کا حکم دیا۔‬
‫حدثنا موسى بن مسعود‪ :‬حدثنا زائدة بن قدامة‪ ،‬عن هشام بسسن عسسروة‪ ،‬عسسن فاطمسسة‬
‫بنت المنذر‪ ،‬عن أسماء بنت أبي بكر رضي الله عنهما قالت‪ :‬أمسسر النسسبي صسسلى اللسسه‬
‫عليه وسلم بالعتاقة في كسوف الشمس‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2519‬‬
‫سیدہ اسما بنت ابوبکر رضی اللہ عنہا روایت کرتی ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے‬
‫سورج گرہن کے وقت غلم آزاد کرنے کا حکم دیا۔‬

‫اس بات کا اندازہ کرنا تو مشکل ہو گا کہ ان مذہبی احکام کے نتیجے میں کتنسسے غلم‬
‫آزاد ہوئے البتہ یہ ضرور معلوم ہوتا ہے کہ دین اسلم غلموں کو آزاد کرنے س سے کتنسسی‬
‫دلچسپی رکھتا ہے۔ عربوں کی معاشرت کا مطالعہ کرنے سے یہ معلوم ہوتا ہے کسہ ان‬
‫کے ہاں قسم کھانے اور غصے میں بیوی کو ماں قرار دے لینے کے معاملت ہوتے ہی‬
‫رہتے تھے۔ ایک حدیث سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا نے ایک‬
‫مرتبہ قسم توڑنے پر چالیس غلم آزاد فرمائے۔‬

‫قریبی رشت ے دار غلم کی آزادی کا‬
‫قانون‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس بات کا حکم دیا کہ اگر کوئی اپنے قریبی‬
‫رشتہ دار جیسے ماں‪ ،‬باپ‪ ،‬بیٹے‪ ،‬بیٹی‪ ،‬بہن‪ ،‬بھائی وغیرہ کو غلم بنا دیک ھے تسسو اسسے‬
‫خرید کر آزاد کر دے۔ اگر کسی طریقے سے کوئی غلم اپن سے ہی قریسسبی رشسستے دار‬
‫کی ملکیت میں آ جائے تو وہ خود بخود آزاد ہو جائے گا۔‬
‫أخبرنا إسحاق بن إبراهيم ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا جرير عن سهيل ‪ ،‬عن أبيه ‪ ،‬عن أبسسي هريسسرة‬
‫قال ‪ :‬قال رسول الله صلى الّله عليه وسلم ل يجزي ولد والسسدا إل أن يجسسده مملوكسسا‬
‫فيشتريه فيعتقه ‪) .‬سنن الکبری نسائی‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(4876‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬کسی بیٹے کے لئے یہ جائز نہیں ہے کہ وہ اپنے والدین کو غلم دیک ھے تسسو انہیسسں خریسسد‬
‫کر آزاد نہ کرے۔"‬

‫حدثنا مسلم بن إبراهيم وموسى بن إسماعيل قال‪ :‬ثنا حماد بسسن سسسلمة‪ ،‬عسسن قتسسادة‪،‬‬
‫عن الحسن‪ ،‬عن سمرة‪ ،‬عن النبي صلى الّله عليه وسلم‪ ،‬وقال موسسسى فسسي موضسسع‬
‫آخر‪ :‬عن سمرة بن جندب فيما يحسب حماد قال‪ :‬قال رسول الّله صلى الل ّسسه عليسسه‬
‫وسلم‪" :‬من ملك ذا رحم ٍ محرم ٍ فهو حّر"‪) .‬ابو داؤد‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪ ،3949‬ابن‬
‫ماجة ‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2326‬‬
‫سیدنا سمرہ بن جندب رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‬
‫‪74‬‬

‫نے فرمایا‪" ،‬جو کوئی اپنے ذی رحم کا مالک ہو جائے تو وہ آزاد ہو جائے گا۔‬

‫اس بات کا اندازہ کرنا بھی مشکل ہے کہ اس قانون ک سے تحسست کتن سے غلم آزاد ہوئے‬
‫لیکن ان سے بھی یہ معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے مختلف‬
‫صورتوں میں غلم آزاد کرنے کی کس حد تک ترغیب دی ہے۔‬

‫وصیت ک ے ذریع ے غلموں کی آزادی‬
‫کا قانون‬
‫بعض لوگ مرتے وقت یہ وصیت کر جایا کرتے تھے کہ ان کے غلموں کسسو آزاد کسسر دیسسا‬
‫جائے۔ ایسے غلم "مدبر" کہلیا کرتے تھے۔ رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫اسے زیادہ پسند نہیں فرمایا بلکہ حکم دیا کہ غلم کو اپنی زندگی ہی میسسں جلسسد س سے‬
‫جلد آزاد کر دیا جائے۔‬
‫قال أخبرنا قتيبة بن سعيد ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا أبو الحوص ‪ ،‬عن أبي إسحاق ‪ ،‬عن أبي‬
‫حبيبة ‪ ،‬عن أبي الدرداء أن رسول الله ‪ r‬قال الذي يعتق عند الموت كالذي يهدي‬
‫بعدما شبع ‪) .‬سنن نسائی الکبری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(4873‬‬
‫سیدنا ابو دردا رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کسہ رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ والسہ وسسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" :‬جو شخص بھی مرتے وقت غلم آزاد کرتا ہے‪ ،‬وہ تو اس شخص کسسی طسسرح ہے جسسو‬
‫)گناہوں سے( اچھی طرح سیر ہونے کے بعد )نیکی کی طرف( ہدایت پاتا ہے۔‬

‫یہاں پر بعض لوگوں کو شاید یہ خیال گزرے کہ رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫نے خود بھی تو مرض وفات میں چالیس غلموں کو خرید کر آزاد کیا تھا۔ ایسا نہیں‬
‫تھا کہ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ان چالیس غلموں س سے سسساری عمسسر خسسدمت‬
‫لیتے رہے تھے اور عین وفات کے وقت نہیں آزاد فرما دیا تھا۔ آپ نے آخسسر وقسست میسسں‬
‫ان غلموں کو خرید کر آزاد فرمایا۔‬
‫اسلم کے قانون وراثت میں وصیت صرف ایک تہائی مال میں کرنے کی اجازت‬
‫ہے اور دو تہائی مال کے بارے میں قرآن نے واضح طور پر مختلف وارثوں کے حصسسے‬
‫مقرر کر دیے ہیں۔ بعسسض اوقسسات ایسسسی صسسورت پیسسش آ جسساتی کسہ ایسسک شسسخص نسے‬
‫غلموں کی آزادی کے علوہ اور بھی وصسسیتیں کسسر رک ھی ہیسسں۔ ایسسسی صسسورت میسسں‬
‫غلموں کسی آزادی کسسو فسسوقیت دی گئی۔ انہیسسں آزاد کرنسے کسے بعسسد اگسسر مالسسک کسی‬
‫جائیداد کے ایک تہائی حصے میں سے کچھ باقی بچتسسا تسسو اس سسے وہ وصسیتیں پسوری‬
‫کی جاتی تھیں ورنہ نہیں۔ اس ضمن میں اگرچہ کوئی مرفوع حدیث ہمیں نہیں مسسل‬
‫سکی لیکن مسلمانوں کے بڑے اہل علم کا یہی نقطہ نظر رہا ہے۔‬
‫حدثنا الحسين بن بشر ثنا المعافى عن عثمان بن السود عن عطاء قال من أوصى‬
‫أو أعتق فكان في وصيته عول دخل العول على أهل العتاقة وأهل الوصية قال عطاء‬
‫ان أهل المدينة غلبونا يبدؤون بالعتاقة‪) .‬دارمی‪ ،‬کتاب الفرائض‪ ،‬حديث ‪(3229‬‬
‫عطاء کہتے ہیں‪" ،‬جس نے غلم کی آزادی کے ساتھ ساتھ کوئی اور وصسسیت ب ھی کسسر دی اور‬
‫وصیت کی مجموعی رقم میں عول داخل ہو گیا )یعنی مجموعی رقم ترکے کے تہائی حصے‬
‫سے زیادہ ہو گئی( تو اہل مدینہ کی غالب اکثریت کا عمل یہ ہے کہ وہ غلموں کسی آزادی سسے‬
‫ابتدا کرتے ہیں۔‬

‫حدثنا المعلى بن أسد ثنا وهيب عن يونس عن الحسن في الرجل يوصي بأشياء‬
‫ومنها العتق فيجاوز الثلث قال يبدأ بالعتق‪) .‬دارمی‪ ،‬کتاب الفرائض‪ ،‬حديث ‪(3227‬‬
‫حسن )بصری( نے ایسے شخص کے بارے میسسں‪ ،‬جسسس ن سے مختلسسف کسساموں اور غلمسسوں کسسی‬
‫آزادی کی وصیت کسی ت ھی اور مجمسسوعی رقسسم ایسسک ت ہائی سسے زائد ہو گئی ت ھی‪ ،‬ارشساد‬
‫‪75‬‬

‫فرمایا‪" ،‬ابتدا غلموں کی آزادی سے کی جائے گی۔"‬

‫حدثنا عبيد الله عن إسرائيل عن منصور عن إبراهيم قال يبدأ بالعتاقة قبل الوصية‪.‬‬
‫)دارمی‪ ،‬کتاب الفرائض‪ ،‬حديث ‪(3232‬‬
‫ابراہیم )نخعی( کہتے ہیں کہ غلموں کو آزادی وصیت )کے باقی معاملت( سے پہلے دی جسسائے‬
‫گی۔‬

‫اس تفصیل سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ تابعین کے جلیل القسسدر ائم سہ انسسسانی آزادی‬
‫کو کس قدر اہمیت دیا کرتے تھے۔‬

‫اسلم قبول کرن ے وال ے غلموں کی‬
‫آزادی ک ے اقدامات‬
‫دین اسلم میں مسلم اور غیر مسلم ہر مذہب سے تعلق رکھنے والسسے غلم کسسو آزاد‬
‫کرنے کو ثواب کا کام بتایا گیا ہے۔ سیدنا حکیم بن حزام رضی اللہ عنہ کی روایت جو‬
‫ہم اوپر بیان کر چکے ہیں میں یہ صراحت موجود ہے کہ غیر مسلم غلم کو آزاد کرنسسا‬
‫بھی ثواب کا کام ہے۔ صحابہ کرام رضی اللسہ عن ہم کسا عمسل ی ہی ر ہا ہے کسہ وہ غیسر‬
‫مسلم غلموں کو بھی آزاد کیا کرتے تھے۔‬
‫دنیا بھر کی اقوام کا یہ اصول ہے کہ کسی بھی نیکی یا بھلئی ک سے کسسام کسسا آغسساز‬
‫ہمیشہ اپنے گھر سے ہوتا ہے۔ اگر کسی قوم میں غرباء و مساکین پائے جاتے ہوں اور‬
‫اس قوم کے امیر لوگ اپنی قوم کے غرباء کو چھوڑ کر دنیا کے دوسرے خطوں میں‬
‫جا کر رفاہی کام کرنا شروع کر دیں تو یہ رویہ سب کے نزدیک قابل اعتراض ہی ہو‬
‫گا۔ یہی وجہ ہے کہ مسلمانوں کے ہاں غلم آزاد کرنے ک سے معسساملے میسسں ترجیسسح ان ہی‬
‫غلموں کو دی گئی جو کہ اسلم قبول کر چکے ہوں۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی مکی زندگی میں مسلمانوں کسسو اقتسسدار‬
‫حاصل نہ تھا۔ اس دور میں یہ طریق کار اختیار کیا گیا کہ جو غلم بھی اسسسلم قبسسول‬
‫کرے‪ ،‬اسے صاحب ثروت مسلمان خرید کر آزاد کر دیں۔ یہ بسات ہم تسک تسسواتر سسے‬
‫منتقل ہوئی ہے کہ سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی دولت کا بسسڑا حصسہ غلمسسوں‬
‫کو آزاد کرنے پر صرف کیا گیا ہے۔ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں‪:‬‬
‫حدثنا أبو نعيم‪ :‬حدثنا عبد العزيز بن أبي سلمة‪ ،‬عن محمد بن المنكسسدر‪ :‬أخبرنسسا جسسابر‬
‫بن عبد الله رضي الله عنهما قال‪ :‬كان عمر يقول‪ :‬أبسسو بكسسر سسسيدنا‪ ،‬وأعتسسق سسسيدنا‪.‬‬
‫يعني بلل‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب الفضائل‪ ،‬حديث ‪(3754‬‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کہا کرتے تھے‪" ،‬ابوبکر ہمارے سردار ہیں اور انہوں نے ہمارے سردار‬
‫یعنی بلل کو آزاد کیا تھا۔"‬

‫مدینہ ہجرت کرنے کے بعد مسلمانوں کی ایک حکومت قائم ہو گئی ت ھی جسسس ک سے‬
‫سربراہ خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ت ھے۔ اس دور میسسں مسسسلمان ہونے‬
‫والے غلموں کو نہ صرف خرید کر آزاد کرنے کے لئے زکوۃ فنڈ کسسو اسسستعمال کیسسا گیسسا‬
‫بلکہ پورے عرب سے ہجرت کر کے مدینہ آنے والے غلموں کے لئے یہ قانون بنا دیا گیا۔‬
‫حدثنا إبراهيم بن موسى‪ :‬أخبرنا هشام‪ ،‬عن ابن جريج‪ ،‬وقال عطاء‪ ،‬عن ابن عبسساس‪:‬‬
‫كان المشركون على منزلتين من النسسبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم والمسسؤمنين‪ :‬كسسانوا‬
‫مشركي أهل حرب‪ ،‬يقاتلهم ويقاتلونه‪ ،‬ومشركي أهل عهسسد‪ ،‬ل يقسساتلهم ول يقسساتلونه‪،‬‬
‫وكان إذا هاجرت امرأة من أهل الحرب لم تخطب حتى تحيض وتطهر‪ ،‬فسسإذا طهسسرت‬
‫حل لها النكاح‪ ،‬فإن هاجر زوجها قبل أن تنكح ردت إليه‪ ،‬وأن هاجر عبد منهم أو أمسسة‬
‫‪76‬‬

‫فهما حران ولهما ما للمهاجرين‪ ،‬ثم ذكسسر مسسن أهسسل العهسسد مثسسل حسسديث مجاهسسد‪ :‬وأن‬
‫هاجر عبد أو أمسسة للمشسسركين أهسسل عهسسد لسسم يسسردوا‪ ،‬وردت أثمسسانهم‪) .‬بخسساری‪ ،‬کتسساب‬
‫النکاح‪ ،‬حديث ‪(5286‬‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں‪ :‬نبی صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسلم اور مسومنین‬
‫کا مشرکین سے معاملہ دو طرح کا تھا۔ بعض مشرکین "اہل حرب" تھے۔ وہ مسلمانوں س سے‬
‫جنگ کرتے اور مسلمان ان سے جنگ کرتے۔ دوسری قسم کے مشرکین "اہل ع ہد" ت ھے۔ ن سہ‬
‫تو وہ مسلمانوں سے جنگ کرتے اور نہ ہی مسلمان ان سے جنگ کرتے۔ اگسسر ا ہل حسسرب کسسی‬
‫کوئی خاتون )مسلمان ہو کر( ہجرت کرتیں تو انہیں حیض آنے اور پھر پاک ہونے تک نکاح کسسا‬
‫پیغام نہ بھیجا جاتا تھا۔ جب وہ پاک ہو جاتیں تو ان کے لئے نکاح کرنا جسسائز ہو جاتسسا ت ھا۔ اگسسر‬
‫نکاح کرنے سے پہلے ان کا خاوند بھی )مسلمان ہو کر( ہجرت کر کے آ پہنچتا تو ان کسسا رشسستہ‬
‫برقرار رکھا جاتا۔‬
‫اگر اہل حرب کے کوئی غلم یا لونڈی ہجرت کر کے آ جاتے تو انہیں آزاد قرار دے دیا جاتا اور‬
‫ان کا درجہ مہاجرین کے برابر ہوتا۔۔۔۔اور اگر اہل عہد کے کوئی غلم یا لونڈی ہجرت کر کے آ‬
‫جاتے تو انہیں واپس لوٹایا نہ جاتا بلکہ ان کی قیمت ان کے مالکان کو بھیج دی جاتی۔‬

‫اسی اصول پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے صلح حدیبیہ کے موقع پر صلح‬
‫کا معاہدہ طے پا جانے سے پہلے آنے والے دو غلموں کو آزادی عطا فرمائی۔‬
‫حدثنا عبد العزيز بن يحيى الحّراني‪ ،‬قال‪ :‬حدثني محمد يعني ابن سسسلمة عسسن محمسسد‬
‫حسَراش‪ ،‬عسن‬
‫ي بسسن ِ‬
‫بن إسحاق‪ ،‬عن أبان بن صالح‪ ،‬عن منصور بن المعتمر‪ ،‬عن رِْبعس ّ‬
‫ن إلى رسول الّله صسسلى الل ّسسه عليسسه وسسسلم يعنسسي‬
‫ي بن أبي طالب قال‪ :‬خرج ِ‬
‫دا ٌ‬
‫عب ْ َ‬
‫عل ّ‬
‫يوم الحديبية قبل الصلح‪ ،‬فكتب إليه مواليهم فقالوا‪ :‬يامحمد‪ ،‬والّله مسسا خرجسسوا إليسسك‬
‫رغبة في دينك‪ ،‬وإنما خرجوا هربا ً من الّرق‪ ،‬فقال ناس‪ :‬صدقوا يارسسسول الل ّسسه ُرّدهسسم‬
‫إليهم‪ ،‬فغضب رسول الّله صلى الّله عليه وسلم وقال‪" :‬ما أراكسسم تنتهسسون يسسا معشسسر‬
‫ش حتى يبعث الّله ]عزوجسسل[ عليكسسم مسسن يضسسرب رقسسابكم علسسى هسسذا" وأبسسى أن‬
‫قري ٍ‬
‫يرّدهم‪ ،‬وقال‪" :‬هم عتقاء الّله عزوجل"‪) .‬ابو داؤد‪ ،‬کتاب الجهاد‪ ،‬حديث ‪(2700‬‬
‫سیدنا علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں‪ :‬حدیبیہ کے دن صلح سے پہلسے )ا ہل مکسہ‬
‫کے( دو غلم رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے پاس آ گئے۔ ان کے مسسالکوں ن سے رسسسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو خط لکھا اور کہا‪" ،‬اے محمد! خدا کی قسم ی سہ آپ ک سے دیسسن‬
‫سے رغبت کے باعث آپ کے پاس نہیں آئے۔ یہ تو محض آزادی حاصسل کرنسے کسے لئے آپ کسے‬
‫پاس آئے ہیں۔"‬
‫لوگ کہنے لگے‪" ،‬یا رسول اللہ! ان کے مالسسک درسسست ک ہہ ر ہے ہیسسں۔ آپ انہیسسں واپسسس بھجسسوا‬
‫دیجیے۔" رسول اللہ صلی اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اس بات پسسر سسسخت نسساراض ہوئے اور‬
‫فرمانے لگے‪" ،‬اے گروہ قریش! میں سمجھتا ہوں کہ تسم اس کسام )یعنسی غلمسی کسو برقسرار‬
‫رکھنے( سے اس وقت تک باز نہ آؤ گے جب تک کہ اللہ عزوجل تمہاری طرف کسی ایسے کسسو‬
‫نہ بھیجے جو تمہاری گردنوں پر اس کی پاداش میں ضرب لگائے۔" آپ نے انہیں واپس کرنسسے‬
‫سے انکار کر دیا اور فرمایا‪" ،‬وہ اللہ عزوجل کی رضا کے لئے آزاد ہیں۔"‬

‫اسی اصول پر آپ نے طائف کے محاصرے کے وقت اعلن فرما دیا تھا کہ اہل طائف‬
‫کے غلموں میں سے جو آزادی کا طالب ہو‪ ،‬وہ ہماری طرف آ جائے۔‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا يحيى بن زكريا حدثنا الحجاج عن الحكم عن مقسم‬
‫عن ابن عباس قال‪ :‬لما حاصر رسول الله صلى الله عليه وسلم أهل الطائف أعتق‬
‫من رقيقهم‪) .‬مسند احمد‪ ،‬باب عبدالله بن عباس‪ ،‬مصنف ابن ابی شيبة‪ ،‬حديث ‪(34283‬‬
‫سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسسہ‬
‫وسلم نے ا ھل طسائف کسا محاصسسرہ کیسسا تسو ان کسے غلمسسوں میسسں سسے )ان غلمسسوں کسو جسسو‬
‫مسلمانوں کی طرف آ گئے تھے( آزاد فرما دیا۔‬

‫مشہور مستشرق ولیم میور اس اعلن کے بارے میں لکھتے ہیں‪:‬‬
‫آپ نے محصورین کے پاس ایک اعلن بھیجا جس سے وہ لوگ ب ہت نسساراض ہوئے۔ اس اعلن‬
‫‪77‬‬

‫کا مضمون یہ تھا کہ اگر شہر سے کوئی غلم ہمارے پاس آئے گا تو اسے آزاد کر دیا جائے گسسا۔‬
‫تقریبا ً بیس غلموں نے اس اعلن سے فائدہ اٹھایا اور وہ اپنے آزادی دینے والے کسے سسسچے اور‬
‫بہادر پیرو ثابت ہوئے۔‬
‫)ولیم میور‪(The life of Mohamet ،‬‬

‫مشہور مورخ بلذری نے "فتوح البلدان" میں ان میں سے بعض غلموں کے نام بیسسان‬
‫کئے ہیں۔ ان میں سے ایک ابوبکرہ نقیع بن مسروح رضسسی الل سہ عن سہ ب ھی ت ھے۔ بکسسرہ‬
‫عربی میں چرخی )‪ (Pulley‬کو کہتے ہیں۔ انہیں یہ نام اس لئے دیا گیا کہ یہ قلع سے کسسی‬
‫دیوار پر موجود چرخی کے رسے سے لٹک کر نیچے اتسسرے ت ھے۔ ان میسسں ایسسک رومسسی‬
‫لوہار ابو نافع بن الزرق رضی اللہ عنہ بھی تھے۔‬
‫ایسے تمام غلموں کو درجہ بلند کرنے کے لئے ان کسی ولء کسسا تعلسسق بسسذات خسسود‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے قائم کیا گیا۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ یہ سب‬
‫کے سب غلم رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے اپنے خانسسدان میسسں شسسامل کسسر‬
‫لئے گئے۔ اس کی تفصیل ہم "ولء" کی بحث میں بیان کریں گے۔‬
‫بعد کے ادوار میں مسلمانوں کے ہاں یسہ رسسسم رائج ہو گئی ک سہ جسسو غلم اسسسلم‬
‫قبول کر لیتا‪ ،‬وہ اسے اس کے مالکسسان س سے خریسسد کسسر آزاد کسسر دیسسا کرت سے ت ھے۔ اس‬
‫طریقے سے بے شمار غلموں نے آزادی حاصل کی۔‬
‫ثسسم ذكسسر السسبيهقى لقصسسة منسسام شسساهدا مسسن طريسسق العمسسش ‪ ،‬عسسن أبسسى وائل ‪ ،‬عسسن‬
‫عبدالله ‪ ،‬وأنه كان من جملة ما جاء به عبيد فأتى بهم أبا بكر ‪ ،‬فلما رد الجميع عليسسه‬
‫رجع بهم ثم قام يصلى فقاموا كلهم يصلون معه ‪ .‬فلما انصرف قال ‪ :‬لمن صسسليتم ؟‬
‫قالوا ‪ :‬لله ‪ .‬قال ‪ :‬فأنتم له عتقاء ‪ .‬فأعتقهم ‪) .‬ابن كثير‪ ،‬سيرة النبوية(‬
‫عبداللہ بیان کرتے ہیں کہ سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ کے پاس جو غلم لئے گئے ان میسسں سسسے‬
‫میں بھی تھا۔ جب سب غلم ان کے سامنے پیش کئے گئے تو وہ ان سے ہٹ کر نمسساز کسے لئے‬
‫کھڑے ہو گئے۔ یہ سب غلم بھی ان کے ساتھ نماز کے لئے کھڑے ہو گئے۔ نماز کسے بعسسد ابسسوبکر‬
‫ان کی طرف مڑے اور پوچھا‪" ،‬تم نے کس کے لئے نماز پڑھی ہے؟" وہ بولے‪" ،‬اللسسہ کسسے لئے۔"‬
‫آپ نے فرمایا‪" ،‬پھر تم اسی کے لئے آزاد ہو۔" یہ کہہ کر آپ نے ان سب کو آزاد کر دیا۔‬

‫ل ‪ :‬مضت السن ُ َ‬
‫عيسى ‪ ،‬ع َن اب َ‬
‫ن لَ‬
‫ن الّزهْرِيّ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ّ ّ‬
‫َ َ ِ‬
‫ةأ ْ‬
‫َ‬
‫ن ِ َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫ن أِبي ذ ِئ ْ ٍ‬
‫ن بْ ُ‬
‫مع ْ ُ‬
‫ب ‪ ،‬عَ ِ‬
‫ِ ْ ِ‬
‫َ‬
‫ما‪) .‬مصنف ابن ابی شيبة‪ ،‬كتاب الجهاد‪ ،‬حديث ‪(23290‬‬
‫م ْ‬
‫يَ ْ‬
‫سل ِ ً‬
‫ست َرِقّ كافٌِر ُ‬
‫ابن شھاب زہری کہتے ہیں کہ )مسلمانوں میں( یہ معمول کی بات ہے کسہ مسسسلمان کسسو غیسسر‬
‫مسلم کا غلم نہیں بننے دیا جاتا۔‬

‫انیسویں صدی کے مستشرق جارج بش لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪It has hence become a standing rule among his followers always to grant their freedom to‬‬
‫‪such of their slaves as embrace the religion of the prophet. (George Bush A.M., Life of‬‬
‫)‪Mohammed‬‬
‫)محمد کے( پیروکاروں میں یہ مستقل دستور بن گیا کہ ان کے غلمسسوں میسسں س سے جسسو ب ھی‬
‫نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے دین میں داخل ہو‪ ،‬اسے آزاد کر دیا جائے۔‬

‫جے ایم وڈنی لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪The absolute equality of all men. In theory at least, it knows neither high nor low, rich nor‬‬
‫‪poor ; all stand upon the same level. The strong tie of a common brotherhood. Caste‬‬
‫‪disappears at its touch. Early Christianity possessed somewhat of this, yet not to the same‬‬
‫‪degree. "La Ilaha il Allah" and the slave was free. (J. M. Widney; The Genesis of‬‬
‫)‪Evolution of Islam & Judaeo - Christianity‬‬
‫)اسلم میں( تمام انسانوں کو مستقل ً برابر قرار دیا گیا ہے۔ کم سے کم نظریاتی طور پسسر‪،‬‬
‫بلند و پست‪ ،‬امیر و غریب سب ایک ہی مقام پر کھڑے ہیں۔ مشترکہ ب ھائی چسسارے کسسا رشسستہ‬
‫‪78‬‬

‫بہت ہی مضبوط ہے۔ ذات و نسل سرے سے ہی مفقود ہے۔ ابتدائی دور کسسی عیسسسائیت میسسں‬
‫بھی اگر اسی درجے میں نہ سی‪ ،‬لیکن کسی حد تک یہی چیز موجود ہے۔ "ل الہ ال الل سہ" ک ہا‬
‫اور غلم آزاد ہو گیا۔‬

‫‪79‬‬

‫باب ‪ :8‬غلموں کا اسٹیٹس‬
‫ب ہتر بنان ے ک ے اقدامات‬
‫دین اسلم نے غلموں کو آزادی عطا کرنے کے لئے جسسو اقسسدامات کئے‪ ،‬ان ک سے نتسسائج‬
‫فوری طور پر برآمد ہونا ممکن نہ تھا۔ غلمی کی جڑیسسں پسسوری دنیسسا ک سے معاشسسروں‬
‫میں اتنی گہری تھیں کہ اسے ختم کرنے کے لئے ایک طویل عرصہ درکار تھا۔ یہی وج سہ‬
‫ہے کہ اس ضمن میں دین اسلم نے تدریجی اصلح کا طریقہ اختیار کیا۔‬
‫انقلبی تبدیلیوں کی یہ خصوصیت ہے کہ وہ جہاں ایک برائی کسسو ختسسم کرتسسی ہیسسں‬
‫وہاں دسیوں نئی برائیوں کو جنم دیتی ہیں۔ اسی وجہ س سے اسسسلم ن سے برائیسسوں ک سے‬
‫خسساتمے کسسے لئے بسسالعموم "انقلب )‪ "(Revolution‬کسسی بجسسائے "تسسدریجی اصسسلح )‬
‫‪ "(Evolution‬کا طریقہ اختیار کیا۔‬
‫حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کے زمانے میں غلموں کی حیثیت بالکسسل‬
‫آج کے زمانے کے ملزمین کی تھی جن پر پوری معیشت کا دارومدار تھا۔ غلمی کے‬
‫خاتمے کی حکمت عملی کو سمجھنے کے لئے اگر درج ذیل مثال پر غور کیا جائے تو‬
‫بات کو سمجھنا بہت آسان ہوگا۔‬
‫موجودہ دور میں بہت سے مالکان )‪ (Employers‬اپن سے ملزمیسسن )‪ (Employees‬کسسا‬
‫استحصال کرتے ہیں۔ ان سے طویل اوقات تک بلمعاوضہ کام کرواتے ہیسسں‪ ،‬کسسم سسے‬
‫کم تنخواہ دینے کی کوشش کرتے ہیں‪ ،‬بسا اوقات ان کی تنخسسواہیں روک لیت سے ہیسسں‪،‬‬
‫خواتین ملزموں کو بہت مرتبہ جنسی طور پر ہراساں کیا جاتا ہے۔‬
‫ان حالت میں آپ ایک مصلح ہیں اور یہ چاہتے ہیں کہ دنیا سے ملزمت کا خسساتمہ‬
‫ہوجائے اور تمام لوگ آزادانہ اپنا کاروبار کرنے کے قابل )‪ (Self Employed‬ہو جسسائیں۔‬
‫آپ نہ صرف ایک مصلح ہیں بلکہ آپ کے پاس دنیا کے وسیع و عریض خطے کا اقتدار‬
‫بھی موجود ہے اور آپ اپنے مقصد کے حصسسول ک سے لئے ب ہت کچ سھ کرسسسکتے ہیسسں۔ان‬
‫حالت میں آپ کا پہل قدم کیا ہوگا؟ کیا آپ یہ قانون بنسا دیسں گسے کسہ آج سسے تمسام‬
‫ملزمین فارغ ہیں اور آج کے بعد کسی کے لئے دوسسسرے کسسو ملزم رکھنسسا ایسسک قابسسل‬
‫تعزیر جرم ہے ؟‬
‫اگر آپ ایسا قانون بنائیں گے تو اس کے نتیجے میں کسسروڑوں بسے روزگسسار وجسسود‬
‫پذیر ہوں گے۔ یہ بے روزگار یقینا روٹی ‪ ،‬کپڑے اور مکان کے حصول ک سے لئے چسسوری ‪،‬‬
‫ڈاکہ زنی ‪ ،‬بھیک اور جسم فروشی کا راستہ اختیار کریں گے۔ جس کے نسستیجے میسسں‬
‫پورے معاشرے کا نظام تلپٹ ہوجائے گا اور ایک بسسرائی کسسو ختسسم کرن سے کسسی انقلبسسی‬
‫کوشش کے نتیجے میں ایک ہزار برائیاں پیدا ہوجائیں گی۔‬
‫یہ بات بالکل واضح ہے کہ ملزمسست کسے مسسسئلے کسسو حسسل کرنسے کسے لئے تسسدریجی‬
‫اصلح کا طریقہ ہی کارآمد ہے۔ اس طریقے کے مطابق مالک و ملزم کے تعلسسق کسسی‬
‫بجائے کوئی نیا تعلق پیدا کیا جائے گا۔ لوگوں میں یہ شعور پیدا کیا جسسائے گسسا وہ اپن سے‬
‫کاروبار کو ترجیح دیں۔ انہیں کاروبار کرنے کی تربیت دی جسسائے گسسی۔ جسسو لسسوگ اس‬
‫میں آگے بڑھیں‪ ،‬انہیں بل سود قرضے دیے جائیں گے اور تسسدریجا ً تمسسام لوگسسوں کسسو ‪8‬‬
‫گھنٹے کی غلمی سے نجات دل کر مکمل آزاد کیسسا جسسائے گسسا۔ )واضسسح ر ہے کسہ کسسارل‬
‫‪80‬‬

‫مارکس اس مسئلے کا ایک حل ’’کمیونزم ‘‘ پیش کرچکے ہیں اور دنیا کے ایک بسسڑے‬
‫حصے نے اس کا تجربہ کرنے کی کوشش بھی کی ہے جو ناکام رہا۔(‬
‫عین ممکن ہے کہ اس سارے عمل میں صدیاں لگ جائیں۔ ایک ہزار سال کے‬
‫بعد‪ ،‬جب دنیا اس مسئلے کو حل کرچکی ہو تسسو ان میسسں سسے ب ہت سسے لسسوگ اس‬
‫مصلح پر تنقید کریں اور یہ کہیں کہ انہوں نے ایسا کیسسوں نہیسسں کیسسا‪ ،‬ویسسسا کیسسوں کیسسا‬
‫مگر اس دور کے انصاف پسسسند یسہ ضسسرور کہیسسں گ سے ک سہ اس عظیسسم مصسسلح نسے اس‬
‫مسئلے کے حل کے لئے ابتدائی اقدامات ضرور کئے تھے۔‬
‫اب اسی مثال کو مدنظر رکھتے ہوئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کے دور‬
‫پر غور کیجیے۔ اسلم غلمی کا آغاز کرنے وال نہیں تھا۔ غلمی اسے ورثے میں ملسسی‬
‫تھی۔ اسلم کو اس مسئلے سے نمٹنا تھا۔ عرب میں بلمبالغہ ہزاروں غلم موجسسود‬
‫تھے۔ جب فتوحات کے نتیجے میں ایران ‪ ،‬شام اور مصسسر کسی مملکسستیں مسسسلمانوں‬
‫کے پاس آئیں تو ان غلموں کی تعداد کروڑوں تک پہنچ گئی۔ اگسسر ان سسسب غلمسسوں‬
‫کو ایک ہی دن میں آزاد کر دیا جاتا تو نتیجہ اس کے سوا کچسھ نسہ نکلتسسا کسہ کسسروڑوں‬
‫کی تعداد میں طوائفیں‪ ،‬ڈاکو‪ ،‬چور اور بھکاری وجسسود میسسں آ جسساتے جنہیسسں سسسنبھالنا‬
‫شاید کسی کے بس کی بات نہ ہوتی۔‬
‫اس صورتحال میں اس کے سوا اور کوئی حل نہ تھا کہ غلمی کسسو کچ سھ عرص سے‬
‫کے لئے برداشت کر لیسسا جسسائے اور اس کسے سسساتھ سسساتھ غلمسسوں کسسو آزاد کرنسے کسسی‬
‫تحریک چلئی جائے۔ اس عرصے کے دوران جو لوگ غلمی کسی حسالت میسں موجسود‬
‫ہیں‪ ،‬ان کے لئے قانونی اور سماجی نوعیت کی ایسی اصسسلحات )‪ (Reforms‬کسسر دی‬
‫جائیں جس کے نتیجے میں ان لوگوں کی زندگی آسان ہو جسسائے اور انہیسسں معاشسسرے‬
‫میں پہلے کی نسبت بہتر مقام مل سکے۔‬
‫اس ضمن میں جو اصلحات کی گئیں‪ ،‬انہیں ہم ان عنوانات میں تقسیم کسسر سسسکتے‬
‫ہیں‪:‬‬
‫• غلموں کی عزت نفس سے متعلق اصلحات‬
‫• غلموں سے حسن سلوک‬
‫• غلموں کو بنیادی ضروریات کی فراہمی‬
‫• مالک کے معیار زندگی کے مطابق خوراک کی فراہمی‬
‫• مالک کے معیار زندگی کے مطابق لباس کی فراہمی‬
‫• مالک کے معیار زندگی کے مطابق علج کی فراہمی‬
‫• غلم کی طاقت و صلحیت کے مطابق کام اور اس میں مالک سے مسسدد کسسا‬
‫حصول‬
‫• غلموں پر ہر قسم کے تشدد کی ممانعت‬
‫• غلموں کے ازدواجی حقوق‬
‫• شادی کا حق‬
‫• طلق کا حق‬
‫• آزاد خاتون سے شادی کرنے اور طلق دینے کا حق‬
‫• اپنی فیملی کو اپنے ساتھ رکھنے کا حق‬
‫‪81‬‬

‫• غلموں کے قانونی حقوق‬
‫• غلم کی جان‪ ،‬مال اور عزت کی حفاظت کا حق‬
‫• مالک پر عدالت میں مقدمہ کرنے کا حق‬
‫• گواہی دینے کا حق‬
‫• مال رکھنے کا حق‬
‫• مال غنیمت میں حصہ لینے کا حق‬
‫• جرم کرنے کی صورت میں نصف سزا‬
‫• غلموں کے سیاسی حقوق‬
‫• آقا اور غلم کے تعلقات میں بہتری‬
‫• غلموں کی خرید و فروخت سے متعلق اصلحات‬
‫• نیم غلم طبقوں سے متعلق اصلحات‬
‫اب ہم ان کی تفصیل بیان کرتے ہیں۔‬

‫غلموں کی عزت نفس س ے متعلق‬
‫اصلحات‬
‫جیسا کہ اوپر بیان کیا جا چکا ہے کہ اسلم سے قبل کے زمانے میں غلمسسوں کسسو اپن سے‬
‫آقاؤں کی نسبت کمتر مخلوق خیال کیا جاتا تھا۔ عسسرب میسسں تسسو آقسسا کسسو "رب" اور‬
‫غلم کو "عبد" کہا جاتا تھا جس کے معنی ہی پالنے والے یعنی خدا اور بندے کے ہیسسں۔‬
‫دین اسلم نے ان تمام تصورات کو پاش پاش کرتے ہوئے اس بسسات کسسا اعلن کیسسا کسہ‬
‫امیر و غریب اور آقا و غلم سب خدا کے بندے ہیں۔ یہ سسسب ایسسک ہی بسساپ اور مسساں‬
‫کی اولد ہیں۔ ان میں سے کسی کو کسی پر کسسوئی فضسسیلت حاصسسل نہیسسں ہے۔ اللسہ‬
‫تعالی کے نزدیک وہی افضل ہے جو خدا سے زیادہ ڈرنسے وال اور اس کسے احکسسام کسی‬
‫پابندیاں کرنے وال ہے۔ قرآن مجید میں ہے‪:‬‬
‫ل ل ِتعارُفوا إ َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫م ُ‬
‫م‬
‫خل َ ْ‬
‫س إ ِّنا َ‬
‫م ِ‬
‫ِ ّ‬
‫ن ذ َك َرٍ وَأنَثى وَ َ‬
‫مك ُ ْ‬
‫ن أك َْر َ‬
‫جعَل َْناك ُ ْ‬
‫قَناك ُ ْ‬
‫َيا أي َّها الّنا ُ‬
‫شُعوبا ً وَقََبائ ِ َ َ َ َ‬
‫م ْ‬
‫خِبيٌر‪) .‬الحجرات ‪(49:13‬‬
‫عن ْد َ الل ّهِ أ َت ْ َ‬
‫م َ‬
‫ِ‬
‫م إِ ّ‬
‫ه ع َِلي ٌ‬
‫ن الل ّ َ‬
‫قاك ُ ْ‬
‫اے انسانو! ہم نے تمہیں ایک مسرد اور ایسک عسورت سسے پیسدا کیسا اور )اس کسے بعسد محسض(‬
‫تعارف کے لئے تمہیں قومیں اور قبیلے بنا دیا۔ تم سے اللہ کے نزدیک سسسب س سے زیسسادہ عسسزت‬
‫وال وہی ہے جو اس سے زیادہ ڈرنے وال ہے۔ بے شک اللہ علیم و خبیر ہے۔‬

‫اسی بات کو رسول اللہ صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے بسسار بسسار بیسسان فرمایسسا۔ امسست‬
‫مسلمہ کے سب سے بڑے اجتماع سے اپنسے آخسسری خطسساب میسسں ب ھی آپ نسے ارشسساد‬
‫فرمایا‪:‬‬
‫أيها الناس إن ربكم واحد وإن أباكم واحد كلكم لدم وآدم من تراب أكرمكم عند الله‬
‫اتقاكم‪ ،‬وليس لعربي على عجمي فضل إل بالتقوى۔‬
‫اے انسانو! تم سب ایک ہی رب کسے بنسسدے اور ایسسک ہی بسساپ آدم کسسی اولد ہو اور آدم کسسی‬
‫تخلیق مٹی سے ہوئی تھی۔ اللہ کے نزدیک تم میں سے سب سے زیسسادہ عسسزت وال وہ ہے جسسو‬
‫اس سے زیادہ ڈرنے وال ہے۔ کسی عربی کو عجمی پر سوائے تقسسوی کسے اور کسسوئی فضسسیلت‬
‫حاصل نہیں ہو سکتی۔‬
‫‪82‬‬

‫مساوات کے اسی اصول کی بنیاد کی بنیاد پر حضور صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے‬
‫غلموں کو "عبد" اور آقا کو "رب" کہلئے جانے سے منع فرما دیا۔‬
‫حدثنا محمد‪ :‬حدثنا عبد الرزاق‪ :‬أخبرنا معمر‪ ،‬عن همام بن منبه‪ :‬أنه سمع أبا هريسسرة‬
‫رضي الله عنه يحدث عن النبي صلى الله عليه وسلم أنه قال‪ :‬ل يقل أحدكم‪ :‬أطعسسم‬
‫ربك‪ ،‬وضئ ربك‪ ،‬اسق ربك‪ ،‬وليقسل‪ :‬سسيدي مسولي‪ ،‬ول يقسل أحسدكم‪ :‬عبسدي أمستي‪،‬‬
‫وليقل‪ :‬فتاي وفتاتي وغلمي۔ )بخاری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2552‬‬
‫ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے فرمایسسا‪" :‬تسسم میسسں‬
‫سے کوئی )اپنے غلم سے( یہ نہ کہے کہ اپنے رب کو کھانا کھلؤ‪ ،‬اپنے رب کو وضو کرواؤ‪ ،‬اپنے‬
‫رب کو پانی پلؤ بلکہ یہ کہا کرو کہ میرے سردار یا میسرے مسول۔ )اسسی طسرح( تسم میسں سسے‬
‫کوئی )اپنے غلم کو( اپنا بندہ یا بندی نہ کہا کرے بلکہ وہ اسے میسسرا بیٹسسا‪ ،‬میسسری بیسسٹی یسسا میسسرا‬
‫لڑکا کہے۔‬

‫کہنے کو تو یہ محض الفاظ کی تبدیلی تھی لیکن اس کے اثسسرات ن ہایت ہی دور رس‬
‫تھے۔ اس تبدیلی نے آقا اور غلم دونوں کی ذہنیت کو بدلنے میں اہم کسسردار ادا کیسسا۔‬
‫دونوں ہی کو یہ معلوم ہو گیا کہ ہم اللہ کے نزدیک ایک دوسرے کے برابر ہیں۔ صسسرف‬
‫دنیاوی معاملت میں ایک دوسرے کا ماتحت ہے اور ہمیں دنیا میں اس تعلق کو بھی‬
‫اس طریقے سے نبھانا چاہیے کہ غلم‪ ،‬آقا کو اپنے باپ کا درجہ دے اور آقا غلم کو بیٹا‬
‫یا بیٹی سمجھے۔ حافظ ابن حجر عسقلنی اس حدیث کی شرح میں لکھتے ہیں‪:‬‬
‫فأرشد صلى الله عليه وسلم إلى ما يؤدي المعنى مع السلمة من التعاظم لن لفظ‬
‫التي والغلم ليس دال على محض الملك كدللة العبد فقد كثر اسسستعمال الفسستى فسسي‬
‫الحر وكذلك الغلم والجارية۔ )فتح الباری شرح بخاری‪ ،‬کتاب العتق(‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے یہ ہدایت دی کہ ایسے الفاظ میسسں معنسسی ادا کئے جسسائیں جسسو‬
‫تکبر سے پاک ہوں۔ )عربی میں( لفظ "غلم )یعنی لڑکا(" ملکیت پر دللت نہیں کرتسسا جیسسسا‬
‫کہ لفظ "عبد" کرتا ہے۔ لفظ الفتی )یعنی بیٹا( ‪ ،‬غلم )لڑکا(‪ ،‬جساریہ )لڑکسی( کسے الفساظ آزاد‬
‫لوگوں کے لئے بھی بکثرت استعمال کئے جاتے ہیں۔‬

‫غلم کو جو حقوق دیے گئے‪ ،‬اگر ان کی تفصیل دیکھی جائے تو یہ معلوم ہوتسسا ہے ک سہ‬
‫ان حقوق نے بھی غلموں اور ان کے آقاؤں میں ایک بڑی نفسیاتی تبدیلی پیدا کسسی۔‬
‫چونکہ غلموں کو بھی اتنا ہی انسان تسلیم کر لیا گیا تھا جتنسے کسہ ان کسے آقسا ت ھے‪،‬‬
‫اس وجہ سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے خصوصسسی طسسور پسسر انہیسسں کچسھ‬
‫حقوق عطا فرمائے۔ یہ حقوق ایسے تھے کہ ان کی بدولت غلم اور آزاد کے اسسسٹیٹس‬
‫میں زیادہ فرق باقی نہ رہ گیا۔‬

‫غلموں س ے حسن سلوک کا حکم‬
‫مسلمانوں کی ذہنیت کو تبدیل کرتے ہوئے انہیں اس بات کا پابنسسد کسسر دیسسا گیسسا ک سہ وہ‬
‫غلموں سے اچ ھا سسسلوک کریسسں اور اپنسے دوسسسروں کسے مقسسابلے میسسں بسسالعموم اور‬
‫غلموں کے مقابلے میں بالخصوص تکبر نہ کریں۔‬
‫شسسرِ ُ‬
‫كوا ِبسسهِ َ‬
‫ه َول ت ُ ْ‬
‫مى‬
‫ذي ال ْ ُ‬
‫سسسانا ً وَِبسس ِ‬
‫ن إِ ْ‬
‫َواع ُْبسس ُ‬
‫ح َ‬
‫قْرَبسسى َوال ْي ََتسسا َ‬
‫دوا الّلسس َ‬
‫شسسْيئا ً وَِبال ْ َ‬
‫واِلسسد َي ْ ِ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫مسسا‬
‫جارِ ِذي ال ُ‬
‫صسسا ِ‬
‫سا ِ‬
‫ب ب ِسسال َ‬
‫جارِ ال ُ‬
‫قْرَبى َوال َ‬
‫ن َوال َ‬
‫ن ال ّ‬
‫م َ‬
‫ل وَ َ‬
‫َوال ْ َ‬
‫جن ْ ِ‬
‫ح ِ‬
‫ب َوال ّ‬
‫جن ُس ِ‬
‫س سِبي ِ‬
‫ب َواب ْس ِ‬
‫كي ِ‬
‫َ‬
‫ن َ‬
‫خورا ً )النساء ‪(4:36‬‬
‫خَتال ً فَ ُ‬
‫م ْ‬
‫ه ل يُ ِ‬
‫كا َ‬
‫ح ّ‬
‫م إِ ّ‬
‫ن ُ‬
‫ب َ‬
‫ن الل ّ َ‬
‫مان ُك ُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َ ْ‬
‫َ‬
‫م ْ‬
‫اللہ کی عبادت کرو اور اس کے سسساتھ کسسسی کسسو شسسریک نسہ ٹ ھہراؤ۔ والسسدین‪ ،‬رشسستے داروں‪،‬‬
‫یتیموں‪ ،‬مسکینوں‪ ،‬پڑوسی رشتے داروں‪ ،‬ساتھ والے پڑوسیوں‪ ،‬دیگسر سساتھیوں‪ ،‬مسسافروں‬
‫اور غلموں سے اچھا سلوک کرو۔ اللہ کسی غرور کرنے والے متکبر کو پسند نہیں کرتا۔‬

‫‪83‬‬

‫ذہنیت کی اس تبدیلی کے ساتھ ساتھ مسلمانوں کو یہ حکم دیا گیا کہ وہ غلمسسوں کسسو‬
‫اپنے اسٹیٹس تک لنے کی کوشش کریں۔ یہ کوشش انہیں آزاد کر کے بھی ہو سکتی‬
‫ہے اور جب تک وہ غلم ہیں‪ ،‬ان کی حالت بہتر بنا کر بھی ہو سکتی ہے۔‬
‫ضك ُ ْ َ‬
‫ض َ‬
‫مسسا‬
‫ما ال ّ ِ‬
‫ن فُ ّ‬
‫ل ب َعْ َ‬
‫ه فَ ّ‬
‫م ع َل َسسى َ‬
‫ض سُلوا ب ِسَراّدي رِْزقِهِ س ْ‬
‫ق فَ َ‬
‫َوالل ّ ُ‬
‫ذي َ‬
‫ض َِفي الّرْز ِ‬
‫م ع َلى ب َعْ ٍ‬
‫َ‬
‫ن ۔ )النحل ‪(16:71‬‬
‫دو َ‬
‫ح ُ‬
‫ج َ‬
‫مةِ الل ّهِ ي َ ْ‬
‫م ِفيهِ َ‬
‫واٌء أفَب ِن ِعْ َ‬
‫م فَهُ ْ‬
‫مان ُهُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َ ْ‬
‫َ‬
‫س َ‬
‫اللہ نے تم میں سے بعض کو دیگر پر رزق کے معاملے میں بہتر بنایا ہے۔ تو ایسسسا کیسسوں نہیسسں‬
‫ہے کہ جو رزق کے معاملے میں فوقیت رکھتے ہیں وہ اسے غلموں کو منتقل کسسر دیسسں تسساکہ وہ‬
‫ان کے برابر آ سکیں۔ تو کیا اللہ کا احسان ماننے سے ان لوگوں کو انکار ہے؟‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو غلموں کے حقوق کا اس حد تک خیال تھا کہ‬
‫نزع کے عالم میں بھی آپ نے ان کے حقوق ادا کرنے اور ان سے حسن سلوک کرنے‬
‫کی تلقین فرمائی۔‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫م ْ‬
‫حد ّ ُ‬
‫س ِ‬
‫معْت َ ِ‬
‫ن ال ِ‬
‫ت أِبي ي ُ َ‬
‫ما ُ‬
‫ق َ‬
‫دثنا أ ْ‬
‫ح ّ‬
‫ن‪َ .‬‬
‫ن ُ‬
‫مع ْ ُ‬
‫سل َي ْ َ‬
‫م‪ .‬ثنا ال ُ‬
‫ح َ‬
‫ن قََتسساد َة َ ع َ س ْ‬
‫ث عَ س ْ‬
‫مُر ب ْ ُ‬
‫مد ُ ب ْ ُ‬
‫دا ِ‬
‫َ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫سسسو ُ‬
‫ك؛ َقا َ‬
‫ن‬
‫ت َ‬
‫ل الَلسهِ صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم ِ‬
‫مس ُ‬
‫ة وَ ِ‬
‫أن َ‬
‫مال ِ ٍ‬
‫س بْ‬
‫صسي ّةِ َر ُ‬
‫عا ّ‬
‫كسان َ ْ‬
‫ن َ‬
‫حيس َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫م((‪) .‬ابسسن ماجسسة‪ ،‬کتسساب‬
‫ة‪ ،‬وَهُوَ ي ُغَْرِغُر ب ِن َ ْ‬
‫سهِ ))الصل َ‬
‫ه الوََفا ُ‬
‫ف ِ‬
‫ح َ‬
‫َ‬
‫مان ُك ُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َ ْ‬
‫ما َ‬
‫ة‪ .‬وَ َ‬
‫ضَرت ْ ُ‬
‫الوصايا‪ ،‬حديث ‪(2697‬‬
‫سیدنا انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ جب رسول اللہ صسسلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم کسسی‬
‫وفات کا وقسست آن پہنچسسا اور آپ کسسی روح نکسسالی جسسا ر ہی ت ھی‪ ،‬اس وقسست آپ نسے وصسسیت‬
‫فرمائی‪" ،‬نماز اور تمہارے غلم۔"‬

‫غلموں کی بنیادی ضروریات اور ان‬
‫پر کام کا بوج ھ لدن ے کی ممانعت‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے قرآن مجید کی انہی آیات پر عمل کرتے ہوئے‬
‫غلموں کو جو معاشرتی اور معاشی حقوق عطا کئے‪ ،‬ان میں سرفہرست یہ ہے کسہ‬
‫آقاؤں پر یہ ذمہ داری عائد کی گئی کہ وہ غلموں کی تمام ضروریات پوری کرنے کے‬
‫اسی طرح پابند ہیں جیسا کہ وہ اپنی اولد کی ضروریات پوری کرتے ہیسسں۔ دوسسسری‬
‫طرف وہ غلموں سے صرف اتنا ہی کام لے سکتے ہیں‪ ،‬جتنا کام کرنسے کسسی ان میسسں‬
‫طاقت اور صلحیت موجود ہے۔‬

‫غلم کی بنیادی ضروریات‬
‫َ‬
‫حدث َِني مال ِ ٌ َ‬
‫سو ُ‬
‫ل ‪َ :‬قا َ‬
‫ن أ ََبا هَُري َْرة َ َقا َ‬
‫ل الل ّهِ صلى الله عليه وسلم ‪» :‬‬
‫ه‪ ،‬أ ّ‬
‫َ ّ‬
‫ل َر ُ‬
‫ه ب َل َغَ ُ‬
‫ك‪ ،‬أن ّ ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫طيسقُ «۔ )موطسساء‬
‫ي‬
‫سا‬
‫س‬
‫م‬
‫ل‬
‫إ‬
‫ل‬
‫س‬
‫م‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ن‬
‫س‬
‫م‬
‫ف‬
‫ل‬
‫ك‬
‫ي‬
‫ل‬
‫و‬
‫ف‪،‬‬
‫رو‬
‫ع‬
‫م‬
‫ل‬
‫با‬
‫ه‬
‫ت‬
‫و‬
‫س‬
‫ك‬
‫و‬
‫ه‬
‫م‬
‫عا‬
‫ط‬
‫ك‬
‫لو‬
‫م‬
‫م‬
‫ُ‬
‫ِ َ َ َ ِ ِ َ ُ ِ‬
‫َ ُ ُ َ ِ ْ َُ ُ ِ َ ْ ُ ِ َ ُ‬
‫ِ‬
‫ل ِل ْ َ ْ‬
‫مالک‪ ،‬کتاب الجامع‪ ،‬حديث ‪ ،2806‬مسلم‪ ،‬کتاب اليمان‪ ،‬حديث ‪(4316‬‬
‫ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے فرمایسسا‪" :‬غلم ک سے‬
‫لئے دستور کے مطابق کھانا اور لباس کی فراہمی )مالک کی( ذمہ داری ہے۔ اس پر کسسام کسسا‬
‫بوجھ صرف اتنا ہی لدا جائے گا جتنی کہ اس میں طاقت ہے۔‬

‫ایک اور حدیث میں ان حقوق کی مزید تفصیلت بیان کی گئی ہیں۔ اس حدیث سے‬
‫یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اپنے صسسحابہ کسسو غلمسسوں‬
‫کے حقوق سے متعلق کیسے تربیت دیا کرتے تھے اور اس کا آپ کے صحابہ پر کیا اثر‬
‫ہوا کرتا تھا۔‬
‫حدثنا أبو بكر بن أبي شيبة‪ .‬حدثنا وكيع‪ .‬حدثنا العمش عن المعرور بن سسسويد‪ .‬قسال‪:‬‬
‫مررنا بأبي ذر بالربذة‪ .‬وعليه برد وعلى غلمه مثله‪ .‬فقلنا يا أبا ذر! لو جمعسست بينهمسا‬
‫‪84‬‬

‫كانت حلة‪ .‬فقال‪ :‬إنه كان بيني وبين الرجل مسسن إخسسوتي كلم‪ .‬وكسسانت أمسسه أعجميسسة‪.‬‬
‫فعيرته بأمه‪ .‬فشكاني إلى النبي صلى الله عليه وسلم‪ .‬فلقيت النبي صلى الله عليسسه‬
‫وسلم‪ .‬فقال )يا أبا ذر! إنك امسسرؤ فيسسك جاهليسسة(‪ .‬قلسست‪ :‬يسسا رسسسول اللسسه! مسسن سسسب‬
‫الرجال سبوا أباه وأمه‪ .‬قال )يا أبا ذر! إنك امرؤ فيك جاهليسة‪ .‬هسم إخسوانكم‪ .‬جعلهسم‬
‫الله تحت أيديهم‪ .‬فأطعموهم مما تأكلون‪ .‬وألبسوهم مما تلبسسون‪ .‬ول تكلفسوهم مسا‬
‫يغلبهم‪ .‬فإن كلفتموهم فأعينوهم(۔ )مسلم‪ ،‬کتاب اليمان‪ ،‬حديث ‪(4313‬‬
‫معرور بن سعید کہتے ہیں کہ ہم لوگ )دوران سفر( ربذہ سے گزرے جہاں سیدنا ابوذر غفاری‬
‫رضی اللہ عنہ قیام پذیر تھے۔ ہم نے دیکھا کہ انہوں ن سے ایسسک چسسادر اوڑھ رک ھی ہے اور بالکسسل‬
‫ویسی ہی چادر ان کے غلم نے اوڑھ رکھی ہے۔ ہم نسے ک ہا‪" ،‬ابسے ابسسوذر! اگسسر آپ یسہ دونسسوں‬
‫چادریں لے لیتے تو آپ کا لباس مکمل ہو جاتا۔" انہوں نے فرمایا‪" ،‬مجھ میسسں اور میسسرے ایسسک‬
‫)غلم( بھائی میں کچھ تلخ کلمی ہو گئی تھی۔ ان کی والدہ عجمی تھیسسں۔ میسسں ن سے ان کسسی‬
‫والدہ سے متعلق انہیں طعنہ دے دیا تھا۔ انہوں نے اس کی شسسکایت نسسبی صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم سے کی۔ جب میں آپ نے مل تو آپ نے فرمایا تھا۔'اے ابوذر! تم میں تو ابھی جسساہلیت‬
‫کا اثر باقی ہے۔'‬
‫میں نے عرض کیا‪' ،‬یا رسول اللہ! اگر کوئی کسی کو برا بھل ک ہے گسسا تسسو وہ اس ک سے مسساں‬
‫باپ کو برا کہے گا۔' آپ نے فرمایا‪' ،‬اے ابوذر!تم میں جاہلیت کا اثر باقی ہے )کسہ اگسر تمہیسسں‬
‫کوئی برا کہے تو تم بھی اسے ہی کہو نہ کہ اس کے ماں باپ کو۔( یہ )غلم( تو تمہارے ب ھائی‬
‫ہیں۔ انہیں اللہ تعالی نے تمہارے ماتحت کیا ہے۔ انہیں وہی کھلؤ جو تم خود کھاتے ہو اور انہیں‬
‫وہی لباس پہناؤ جو تم خود پہنتے ہو۔ ان پر کام کا اتنا بوجھ نہ لدو جس کی ان میسسں طسساقت‬
‫نہ ہو اور اگر کام سخت ہو تو پھر خود اس میں ان کی مدد کرو۔' "‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے صحابہ و اہل بیت غلموں کی ضسسروریات کسسا‬
‫خیال کس طرح رکھا کرتے تھے۔ اس کی ایک مثال تو سیدنا ابوذر غفاری رضی اللسہ‬
‫عنہ کی حدیث میں آپ ملحظہ فرما چکے۔ دوسری مثال سیدہ عائشہ رضی اللہ عن ہا‬
‫نے قائم کی۔‬
‫حدثنا أبو نعيم‪ :‬حدثنا عبد الواحد بن أيمن قال‪ :‬حدثني أبي قال‪ :‬دخلت على عائشسسة‬
‫رضي الله عنها‪ ،‬وعليها درع قطسسر‪ ،‬ثمسسن خمسسسة دراهسسم‪ ،‬فقسسالت‪ :‬ارفسسع بصسسرك إلسسى‬
‫جاريتي انظر إليها‪ ،‬فإنها تزهى أن تلبسه في السبيت‪ ،‬وقسسد كسان لسسي منهسن درع علسى‬
‫عهد رسول الله صلى الله عليه وسلم‪ ،‬فما كسسانت امسسرأة تقيسسن بالمدينسسة إل أرسسسلت‬
‫إلي تستعيره‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب الهبة‪ ،‬حديث ‪(2628‬‬
‫ایمن کہتے ہیں کہ میں سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہ کے گھر میں داخل ہوا۔ آپ نے قطر )یمن کا‬
‫ایک کھردرا کپڑا( کا لباس پہن رکھا تھا جس کی قیمت پانچ در ہم ت ھی۔ آپ فرمسانے لگیسں‪،‬‬
‫"میری اس لڑکی کو تو دیکھو‪ ،‬یہ اس لباس کو گھر میں پہنن سے س سے ب ھی انکسسار کرتسسی ہے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میں میرے پاس ایسی ایسسک ہی قمیسسص ت ھی۔‬
‫مدینہ میں جس عورت کی بھی شادی ہوتی‪ ،‬وہ مجھ سے اس قمیص کسسو اد ھار مانسسگ لیسستی‬
‫)اور شادی کے بعد واپس کر جاتی۔(‬

‫سیدہ نے اپنی لونڈی پر یہ جبر نہیں کیا کہ جو لباس میں پہن رہی ہوں تسسم اسسے پہننسے‬
‫سے کیوں انکار کرتی ہو بلکہ اس کے نخرے برداشت کئے اور اسے اپنے سے بھی بہتر‬
‫لباس پہننے کو دیا۔‬

‫غلموں پر کام کا بوج ھ لدن ے کی ممانعت‬
‫اوپر بیان کردہ احادیث سے واضح ہے کہ کسی غلم سے اتنا ہی کام اور وہی کام لیسسا‬
‫جا سکتا ہے جو اس کی جسمانی اور ذہنی صلحیتوں کے مطابق ہو۔ اگسسر وہ کسسوئی‬
‫کام سر انجام دینے کی صلحیت نہیں رکھتا تو مالک پر لزم ہے ک سہ وہ خسسود اس کسسی‬
‫مدد کرے۔ ایسے مالک کو اللہ تعالی بہت اجر سے نوازے گا۔‬
‫أخبرنا أبو يعلى قال حدثنا أبو خيثمة قال حدثنا عبد الله بن يزيسسد قسسال حسسدثني سسسعيد‬
‫‪85‬‬

‫بن أبي أيوب قال حدثني أبو هانئ قال حدثني عمرو بن حريث أن رسول الله صسسلى‬
‫الله عليه وسلم قال ما خففت عن خادمك من عملسسه كسسان لسسك اجسسرا فسسي موازينسسك‪.‬‬
‫)صحيح ابن حبان‪ ،‬حديث ‪(4314‬‬
‫عمرو بن حریث رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬جو اپنے خادم کے کام میں کمی کرتا ہے‪ ،‬اسے اس کا اجر اپنے اعمال کسے وزن کسے‬
‫وقت ملے گا۔"‬

‫امام شافعی غلم پر بوجھ لدنے سے متعلق ہوئے فرماتے ہیں‪:‬‬
‫قال شافعی‪ :‬و معنی قولہ "ل یکلف من العمل ال ما یطیسسق" یعنسسی ۔۔ واللسہ اعلسم ۔۔‪ :‬ال مسا‬
‫یطیق الدوام علیہ‪ ،‬لما یطیق یوما اور یومین‪ ،‬او ثلثہ‪ ،‬و نحو ذلک ثم یعجز۔ و جملۃ ذلسسک مسسا‬
‫ل یضر ببدنہ الضرر البین‪ ،‬فان عمی او زمن‪ ،‬انفق علیہ مولہ‪ ،‬و لیسسس ل سہ ان یسترضسسع الم سۃ‬
‫غیر ولدھا ال ان یکون فیہا فضل عن ربسہ‪ ،‬او یکسسون ولسسدھا یغتسسذی بالطعسسام‪ ،‬فیقیسسم بسسدنہ‪ ،‬فل‬
‫باس بہ۔ )بغوی‪ ،‬شرح السنۃ‪ ،‬کتاب النکاح(‬
‫شافعی کہتے ہیں‪ ،‬اس ارشاد کہ "غلم پر کام کا اتنا ہی بوجھ لدا جائے جسسس کسسی وہ طسساقت‬
‫رکھتا ہے۔" کا معنی یہ ہے‪) ،‬اللہ ہی بہتر جاننے وال ہے( کہ اس سے ایسا کام نہ لیسا جسائے جسس‬
‫کا ہمیشہ کرتے رہنا اس کے لئے ممکن نہ ہو۔ اس کا یہ معنی نہیں ہے کہ وہ ایک‪ ،‬دو یا تیسسن دن‬
‫کسی کام کو تو کر لے اور اس کے بعد )بیمار پڑ کسسر( اس سسے عسساجز آ جسسائے۔ اس میسسں وہ‬
‫تمام کام شامل ہیں جن کے نتیجے میسں اس کسسی صسسحت کسسو واضسح نقصسسان پہنسچ سسکتا ہو‬
‫جیسے وہ کسی کام کے نتیجے میں نابینا ہو جائے یا بیمار پڑ جائے۔‬
‫)بیماری کی صورت میں( مالک پر لزم ہے کہ وہ اس پر خرچ کسسرے۔ اس میسسں ی سہ بسسات ب ھی‬
‫شامل ہے کہ کسی لونڈی کو اپنے بچے کے علوہ دوسرے کسی بچے کو دودھ پلنے پسسر مجبسسور‬
‫نہ کیا جائے سوائے اس کے کہ اس پر اپنے رب کا فضل ہو )یعنی ایک بچے کی ضسسرورت س سے‬
‫زیادہ دودھ اترتا ہو(‪ ،‬یا پھر اس کا اپنا بچہ کچھ اور ک ھا کسسر نشسسوونما پسسا ر ہا ہو )اور اس کسسا‬
‫دودھ فالتو ہو گیا ہو( تو پھر کسی اور کے بچے کو دودھ پلنے میں حرج نہیں ہے۔‬

‫بنیادی ضروریات کی فرا ہمی میں حکومت اور‬
‫معاشر ے کا کردار‬
‫کسی کو یہ خیال نہ رہے کہ ان حقوق کی تلقین محض اخلقی نوعیت کی تھی۔ اگسسر‬
‫ایسا بھی ہوتا تب بھی صحابہ کرام کے لئے رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم کسسا‬
‫حکم ہی کافی تھا‪ ،‬لیکن ان حقوق کو قانونی طور پر بھی نافذ کر دیا گیا۔ اس کسسی‬
‫تفصیل ان روایات میں بیان کی گئی ہے۔‬
‫َ‬
‫وحدث َِني مال ِ ٌ َ‬
‫خ ّ‬
‫ب َ‬
‫واِلي ك ُ ّ‬
‫ت‪،‬‬
‫ن ال ْ َ‬
‫س سب ْ ٍ‬
‫ن ي َذ ْهَ ُ‬
‫كا َ‬
‫ه‪ ،‬أ ّ‬
‫َ َ ّ‬
‫ل ي َوْم ِ َ‬
‫ن عُ َ‬
‫ه ب َل َغَ ُ‬
‫ك‪ ،‬أن ّ ُ‬
‫َ‬
‫طا ِ‬
‫ب إ َِلى ال ْعَ َ‬
‫مَر ب ْ َ‬
‫ً‬
‫ه۔ )موطاء مالک‪ ،‬کتاب الجامع‪ ،‬حديث‬
‫طي ُ‬
‫ه ِ‬
‫ل ل َ يُ ِ‬
‫ه‪ ،‬وَ َ‬
‫فَإ َِذا وَ َ‬
‫من ْ ُ‬
‫ضعَ ع َن ْ ُ‬
‫ق ُ‬
‫جد َ ع َْبدا ِفي ع َ َ‬
‫م ٍ‬
‫‪(2807‬‬
‫سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ ہر ہفتے کے دن مدینہ کے گرد و نواح میں )واقع کھیتسسوں‬
‫وغیرہ( میں جایا کرتے اور اگر انہیں کوئی ایسا غلم مل جاتا جو اپنسی طساقت سسے بسڑھ کسر‬
‫کام کر رہا ہوتا تو آپ اس کا بوجھ کم کروا دیتے۔‬

‫َ‬
‫ك‪ ،‬ع َن ع َمه أبي سهيل بن مال ِك‪ ،‬ع َ َ‬
‫مال ِ ٌ‬
‫ن‬
‫ن عَ ّ‬
‫سس ِ‬
‫ن أِبيس ِ‬
‫فسسا َ‬
‫مسسا َ‬
‫ُ َْ ِ ْ ِ َ ٍ‬
‫وَ َ‬
‫ه َ‬
‫معَ ع ُث ْ َ‬
‫ه‪ ،‬أن ّس ُ‬
‫ّ ِ ِ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫ن ب ْس َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قسسو ُ‬
‫مت َسسى‬
‫ل ‪ :‬ل ت ُكل ُ‬
‫ب وَهُسوَ ي َ ُ‬
‫هسوَ ي َ ْ‬
‫مس َ‬
‫وَ ُ‬
‫ة غ َي ْسَر َذا ِ‬
‫سس َ‬
‫خطس ُ‬
‫صسن ْعَةِ الك ْ‬
‫م َ‬
‫ب‪ ,‬فَسإ ِن ّك ْ‬
‫فسوا ال َ‬
‫ت ال ّ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ق‪،‬‬
‫جَها‪ ،‬وَل ت ُكل ُ‬
‫ت بِ َ‬
‫ك َل ّ ْ‬
‫سسَر َ‬
‫مو َ‬
‫سس َ‬
‫جسد ْ َ‬
‫صسِغيَر الك ْ‬
‫ها ذ َل ِك ك َ‬
‫م يَ ِ‬
‫ه إ َِذا لس ْ‬
‫ب‪ ،‬فسإ ِن ّ ُ‬
‫فْر ِ‬
‫سب َ ْ‬
‫فت ُ ُ‬
‫فوا ال ّ‬
‫َ‬
‫من ْهَسسا۔ )موطسساء مالسسک‪ ،‬کتسساب‬
‫فوا إ ِذ ْ أع َ ّ‬
‫ع ّ‬
‫مط َسسا ِ‬
‫وَ ِ‬
‫ب ِ‬
‫م ِ‬
‫مسسا ط َسسا َ‬
‫عم ِ ب ِ َ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫ه‪ ،‬وَع َل َي ْك ُ ْ‬
‫م الل ّ ُ‬
‫فك ُ ُ‬
‫م َ‬
‫الجامع‪ ،‬حديث ‪(2808‬‬
‫سیدنا عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ نے خطبہ دیتے ہوئے ارشاد فرمایا‪" ،‬اگر تم ہاری لون سڈیاں‬
‫کوئی ہنر نہ جانتی ہوں تو انہیں کمانے کے لئے مت ک ہو۔ اگسر تسم ایسسا کسرو گسے تسو اس کسے‬
‫نتیجے میں وہ عصمت فروشی کرنا شروع کر دیں گی۔ بچوں کسو ب ھی کمسانے کسے لئے مست‬
‫کہو کیونکہ اگر انہیں روزگار نہ ملے گا تو وہ چوری شروع کر دیسسں گ سے۔ ان س سے مہربسسانی کسسا‬
‫‪86‬‬

‫سلوک کرو کیونکہ اللہ نے تم سے مہربانی کی ہے۔ تم پر یہ لزم ہے کہ انہیں خسسوراک اور علج‬
‫کی سہولیات مہیا کرو۔‬

‫غلموں کو یہ حق حاصل تھا کہ وہ اپنے مالکوں کے مال میسسں س سے رواج کسے مطسسابق‬
‫بنیادی ضروریات کا سامان لے سکتے تھے۔‬
‫عبد الرزاق عن بن جريج قال سمعت نافعا يحسسدث أن عبسسد اللسسه بسسن عمسسر يقسسول إن‬
‫المملوك ل يجوز له أن يعطي من ماله أحدا شيئا ول يعتق ول يتصدق منه بشسسيء إل‬
‫بإذن سيده ولكنه يأكل بسسالمعروف ويكتسسسي هسسو وولسسده وامرأتسسه‪) .‬مسسستدرک حسساکم؛‬
‫حديث ‪(2856‬‬
‫نافع کہتے ہیں کہ سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما کہا کرتے تھے‪" ،‬غلم کو اس کی اجسسازت تسسو‬
‫نہیں ہے کہ وہ اپنے مالک کے مال میں سے اس کی اجازت کے بغیر کسی کو کوئی چیز دے یا‬
‫مالک کا غلم آزاد کرے یا اس میں سے صدقہ کرے۔ لیکن اسے دستور ک سے مطسسابق اپن سے اور‬
‫اپنے بیوی بچوں کے لئے خوراک اور کپڑا لینے کا حق حاصل ہے۔"‬

‫غلموں کے ان حقوق کا تقدس اس درجے کا تھا کہ سیدنا عمر رضی اللہ عن سہ ن سے ی سہ‬
‫حقوق فراہم نہ کرنے والے مالک پر غلم کے جرم کی سزا نافذ کی۔‬
‫ة‪ ،‬ع َ َ‬
‫مال ِ ٌ‬
‫ن هِ َ‬
‫ب‪،‬‬
‫ن ع ُْروَ َ‬
‫ن أِبي ِ‬
‫ن َ‬
‫ن ع َب ْد ِ الّر ْ‬
‫ن يَ ْ‬
‫وَ َ‬
‫ح َ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫حسساط ِ ٍ‬
‫ه‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ْ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن بْ ِ‬
‫م ِ‬
‫حَيى ب ْ ِ‬
‫شام ِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ن‬
‫حُرو َ‬
‫مَزي ْن َ َ‬
‫سَرقوا َناق ً‬
‫ل ِ‬
‫ة‪ ،‬فان ْت َ َ‬
‫ة ل َِر ُ‬
‫ن َرِقيقا ل ِ َ‬
‫أ ّ‬
‫ب َ‬
‫ها فُرفِعَ ذ َل ِسك إ ِلسسى ع ُ َ‬
‫ن ُ‬
‫حاط ِ ٍ‬
‫م ْ‬
‫ج ٍ‬
‫م سَر ب ْس ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫خ ّ‬
‫م سُر ‪ :‬أ ََرا َ‬
‫م قَسسا َ‬
‫م‪.‬‬
‫ن يَ ْ‬
‫ال ْ َ‬
‫صل ْ ِ‬
‫تأ ْ‬
‫جيعُهُ س ْ‬
‫ك تُ ِ‬
‫ل عُ َ‬
‫م‪ ،‬ث ُ ّ‬
‫قط َعَ أي ْد ِي َهُ ْ‬
‫مَر ع ُ َ‬
‫ب‪ ،‬فَأ َ‬
‫ن ال ّ‬
‫طا ِ‬
‫مُر ك َِثيَر ب ْ َ‬
‫ُ‬
‫ن َناقَت ِس َ‬
‫شقّ ع َل َي ْ َ‬
‫من ّ َ‬
‫م َقا َ‬
‫م َقا َ‬
‫ك غ ُْرما ً ي َ ُ‬
‫ك؟‬
‫م ثَ َ‬
‫ي ك َس ْ‬
‫ل ‪ :‬ل ِل ْ ُ‬
‫ك‪ .‬ث ُ ّ‬
‫مُر ‪َ :‬والل ّهِ لغ َّر َ‬
‫ل عُ َ‬
‫ثُ ّ‬
‫مس ُ‬
‫مَزن ِس ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫قا َ‬
‫قا َ‬
‫ة‬
‫م‪ .‬فَ َ‬
‫فَ َ‬
‫مئ َ ِ‬
‫ن ِ‬
‫ن أْرب َِع ِ‬
‫من َعَُها ِ‬
‫ما َ‬
‫مُر ‪ :‬أع ْط ِهِ ث َ َ‬
‫ل عُ َ‬
‫ت َواللهِ أ ْ‬
‫ي ‪ :‬قَد ْ ك ُن ْ ُ‬
‫ل ال ُ‬
‫م ْ‬
‫مَزن ِ ّ‬
‫مئ َةِ د ِْرهَ ٍ‬
‫د ِْرهَم ٍ۔ )موطاء مالک‪ ،‬کتاب القضية‪ ،‬حديث ‪(2178‬‬
‫عبدالرح ٰمن بن حاطب بیان کرتے ہیں کہ )ان کے والد( حاطب کے ایک غلم نے بنو مزینسہ کسے‬
‫کسی شخص کی اونٹنی چرا کر اسے ذبح کر )کے کھا گیا۔( یہ معاملہ سیدنا عمر بن خطسساب‬
‫رضی اللہ عنہ )کی عدالت میں( لیا گیا۔ )پہلے( سیدنا عمر نے کثیر بن الصسسلت کسسو اس غلم‬
‫کا ہاتھ کاٹنے کا حکم دیا لیکن پھر )آقا سے( ارشاد فرمایا‪" ،‬مجھے لگتسسا ہے تسسم انہیسسں بھوکسسا‬
‫رکھتے ہو۔" پھر فرمایا‪" ،‬اللہ کی قسم! میں تم پر ایسسسا جرمسسانہ عسسائد کسسروں گسسا جسسو تمہیسسں‬
‫ناگوار گزرے گا۔" اس کے بعد بنسو مزینسہ کسے اس مسدعی سسے پوچ ھا‪" ،‬تم ہاری اونٹنسی کسی‬
‫قیمت کیا ہے؟" اس نے کہا‪" ،‬واللہ میں نے تو اس کے چار سو درہم قبول کرنے سے انکار کیا‬
‫تھا۔" سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے آقا سے فرمایا‪" ،‬اسے آٹھ سو درہم ادا کر دو۔"‬

‫غلم کو سات ھ بٹ ھا کر ک ھان ے کا حکم‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے حکم دیسسا ک سہ اگسسر غلم کھانسسا بنسسا کسسر لئے تسسو‬
‫مالک اسے ساتھ بٹھا کر کھلئے۔‬
‫وحدثنا القعنبي‪ .‬حدثنا داود بن قيس عن موسسسى بسسن يسسسار‪ ،‬عسسن أبسسي هريسرة‪ .‬قسسال‪:‬‬
‫قال رسول الله صلى الله عليه وسلم )إذا صنع لحدكم خادمه طعامه ثسسم جسساءه بسسه‪،‬‬
‫وفقد ولى حره ودخانه‪ ،‬فلقعده معه‪ .‬فليأكل‪ .‬فإن كان الطعام مشفوها قليل‪ ،‬فليضع‬
‫في يده منه أكلة أو أكلتين۔ قال داود‪ :‬يعني لقمة أو لقمسستين‪) .‬بخسساری‪ ،‬کتسساب العتسسق‪،‬‬
‫حديث ‪ ،2556‬مسلم کتاب اليمان‪ ،‬حديث ‪(4317‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬جب‬
‫تمہارا کوئی خادم کھانا پکائے اور اسے لے کر تمہارے پاس آئے تو چونکہ اس ن سے کھانسسا پکسسانے‬
‫کے لئے تپش اور دھواں برداشت کیا ہے‪ ،‬اس وجہ سے اسے اپنے ساتھ بٹھا لو اور کھانا کھلؤ۔‬
‫اگر کھانا کم مقدار میں ہو تو اپنے ہاتھ سے اس کے لئے )کم از کم( ایک دو لقمے ہی الگ کر‬
‫دو۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم خود غلموں کے ساتھ کھانا کھایا کرتسسے ت ھے اور‬
‫یہی معاملہ آپ کے صحابہ کا تھا۔ سیدہ بریرہ رضی اللہ عنہا نے آپ کو گوشت کا ایسسک‬
‫‪87‬‬

‫ٹکڑا پیش کیا۔ اس معاملے میں امہات المومنین کو تردد ہوا کیونکہ ی سہ حکسسومت ک سے‬
‫بیت المال کا گوشت تھا جو بریرہ کو دیا گیا تھا۔ بیت المال سے رسسسول اللسہ صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے خاندان کو کچھ لینے کی اجازت ن سہ ت ھی۔ آپ ن سے فرمایسسا‪" ،‬ی سہ‬
‫گوشت بریرہ کے لئے تو صدقہ ہے لیکن ہمسارے لئے بریسرہ کسا تحفسہ ہے اس لئے ک ھانے‬
‫میں کوئی حرج نہیں۔"‬
‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا بھی یہی معاملہ تھا۔ وہ اپن سے غیسسر مسسسلم غلمسسوں‬
‫کے ساتھ بل تکلف کھانا کھایا کرتے تھے۔‬

‫غلموں ک ے حقوق اور صحاب ہ کرام کا کردار‬
‫خلفاء راشدین کا یہ بھی یہی دستور تھا کہ اگر کسی غلم کا مالک اس کسسی کفسسالت‬
‫کرنے میں مشکل محسوس کرتا ہو تو اس کی مدد کیا کرتے تھے۔‬
‫َ‬
‫ة‬
‫خل َسد ٍ ال ْغِ َ‬
‫م ْ‬
‫ن ث َل ََثس ً‬
‫ن ع ُي َي ْن َ َ‬
‫فساِري أ ّ‬
‫م َ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫َ‬
‫ح َ‬
‫ن َ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫ن عَ ْ‬
‫مسد ٍ ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ة ‪ ،‬عَ ْ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫م ٍ‬
‫ن ب ْس ِ‬
‫س ِ‬
‫رو ‪ ،‬ع َ ِ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ة‬
‫ل‬
‫س‬
‫ك‬
‫م‬
‫س‬
‫ه‬
‫ن‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ر‬
‫ل‬
‫ك‬
‫طي‬
‫ع‬
‫ي‬
‫ر‬
‫م‬
‫ع‬
‫ن‬
‫كا‬
‫ف‬
‫‪،‬‬
‫را‬
‫د‬
‫ب‬
‫دوا‬
‫ه‬
‫ش‬
‫ن‬
‫كي‬
‫لو‬
‫م‬
‫ُ‬
‫ف ث َل َث َس َ‬
‫س سن َةٍ ث َل َث َس َ‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ة آل َ ٍ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ُ ْ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫َ ٍ‬
‫َ ُ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ف‪) .‬ابن ابي شيبة؛ حديث ‪(33553‬‬
‫آل َ ٍ‬
‫تین غلموں نے جنگ بدر میں حصہ لیا تھا۔ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ ان میں سے ہر ایسک تسو‬
‫سالنہ تین تین ہزار درہم دیا کرتے تھے۔‬

‫ن أ َِبيهِ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫ن وَع َل ِي ّسسا‬
‫ن َ‬
‫مسسا َ‬
‫هاُرو َ‬
‫َ‬
‫ت ع ُث ْ َ‬
‫شسهِد ْ ُ‬
‫ن ع َن ْت ََرةَ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫وام ِ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن ال ْعَ ّ‬
‫حد ّث ََنا ع َّباد ُ ب ْ ُ‬
‫ن بْ ِ‬
‫يرزَقان أ َ‬
‫ّ‬
‫س‪) .‬ابن ابي شيبة؛ حديث ‪(33554‬‬
‫نا‬
‫ال‬
‫َ‬
‫ء‬
‫قا‬
‫ر‬
‫َْ ُ ِ ِ‬
‫ّ ِ‬
‫سیدنا عثمان اور علی رضی اللسہ عنہمسسا )اپنسے ادوار میسسں( لوگسسوں کسے غلمسسوں کسسو ان کسسی‬
‫ضروریات کا سامان پہنچایا کرتے تھے۔‬

‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم میں سے بہت سوں نے تو غلموں کو معمولی سے خراج‬
‫کے عوض خود کمانے اور کھانے کی اجازت دے دی تھی۔ یہ خسسراج صسسرف ایسسک در ہم‬
‫روزانہ ہوا کرتا تھا۔ یہ اس زمانے کی بات ہے جب غلموں کی قیمتیں ‪ 40,000‬درہم‬
‫تک پہنچ چکی تھیں۔ اس طریقے سے یہ غلم عمل ً آزاد ہو چکے تھے۔‬
‫ح سد ّث ََنا أ َب ُسسو‬
‫ن ال ْ َ‬
‫سى أ َ ْ‬
‫أَ ْ‬
‫ى َ‬
‫ف ْ‬
‫م َ‬
‫م َ‬
‫مو َ‬
‫مو َ‬
‫ن ُ‬
‫ح ّ‬
‫خب ََرَنا ُ‬
‫ن ُ‬
‫ح ّ‬
‫خب ََرَنا ُ‬
‫ل ال ّ‬
‫ضس ِ‬
‫م سد ُ ب ْس ُ‬
‫مد ُ ب ْ ُ‬
‫ص سي َْرفِ ّ‬
‫سسسى ب ْس ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫س ب ْس ُ ْ‬
‫ْ‬
‫حسد ّث ََنا‬
‫ن ي َعْ ُ‬
‫مْزي َسد ٍ أ ْ‬
‫بأ ْ‬
‫خب ََرن ِسسى أب ِسسى َ‬
‫قو َ‬
‫م َ‬
‫ن َ‬
‫ح ّ‬
‫س‪ُ :‬‬
‫خب ََرَنا ال ْعَب ّسسا ُ‬
‫مد ُ ب ْ ُ‬
‫ن الوَِليسد ِ ب ْس ِ‬
‫ال َعَّبا ِ‬
‫ه ن َِهي ُ‬
‫ى قَسسا َ‬
‫قا ُ‬
‫ج ٌ‬
‫ن‬
‫مّنا ي ُ َ‬
‫مِغي ُ‬
‫الوَْزا ِ‬
‫ل ِ‬
‫ل ‪ :‬ك َسسا َ‬
‫م َ‬
‫حد ّث َِنى َر ُ‬
‫ى َ‬
‫ن ُ‬
‫سس َ‬
‫حد ّث َِنى ُ‬
‫ري َ‬
‫ل لَ ُ‬
‫ث بْ ُ‬
‫ك بْ ُ‬
‫ن يَ ِ‬
‫م ّ‬
‫ع ّ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫مس‬
‫ه‬
‫تس‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ل‬
‫خ‬
‫د‬
‫يس‬
‫ل‬
‫ف‬
‫ج‬
‫را‬
‫خس‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ه‬
‫يس‬
‫ل‬
‫إ‬
‫دى‬
‫ؤ‬
‫يس‬
‫ك‬
‫لو‬
‫م‬
‫م‬
‫ف‬
‫ل‬
‫أ‬
‫ه‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ال‬
‫ى‬
‫ض‬
‫ر‬
‫م‬
‫وا‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ُ ْ ِ‬
‫ٍ ُ ّ ِ ْ ِ َ َ َ‬
‫َ َ ْ‬
‫ُ َْ ُ‬
‫ََْ ُ ِ ْ‬
‫َ ّ ِ َ ِ َ‬
‫ِللّزب َي ْرِ ْ ِ‬
‫م َ‬
‫شي ًْئا‪) .‬بيهقى؛ سنن الكبرى؛ حديث ‪(15787‬‬
‫َ‬
‫جه ِ ْ‬
‫خَرا ِ‬
‫سیدنا زبیر بن عوام رضی اللہ عنہ کے ایک ہزار غلم تھے جو انہیں خسسراج ادا کیسسا کرتسے ت ھے۔‬
‫اس خراج میں سے کوئی رقم ان کے گھر میں داخل نہ ہوا کرتسسی ت ھی )یعنسسی وہ سسسب کسسی‬
‫سب رقم انہی غلموں اور دیگر غرباء پر خرچ کر دیا کرتے تھے۔(‬

‫َ‬
‫َ‬
‫خبرنا أ َبو ال ْحسن ب َ‬
‫َ‬
‫حسسد ّث ََنا‬
‫جي ْد ٍ أ َ ْ‬
‫ف أَ ْ‬
‫سل ِم ٍ َ‬
‫ن نُ َ‬
‫معُْرو ِ‬
‫أ ْ ََ َ ُ‬
‫م ْ‬
‫خب ََرَنا أُبو ُ‬
‫خب ََرَنا أُبو ع َ ْ‬
‫ن أِبى ال ْ َ‬
‫رو ب ْ ُ‬
‫َ َ ِ ْ ُ‬
‫م ِ‬
‫عاصم ع َن اب َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م سوْ َ‬
‫ن َقا َ‬
‫لى‬
‫ض سَر َ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫موَْلى ع َب ْد ِ الّر ْ‬
‫أُبو َ ِ ٍ ِ ْ‬
‫ى َ‬
‫ح َ‬
‫ن د ِْرهَم ٍ َ‬
‫ن أِبى ذ ِئ ْ ٍ‬
‫ب عَ ْ‬
‫ب ع َل س ّ‬
‫م ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫مسوْل َ َ‬
‫قا َ‬
‫كُ ّ‬
‫ك‪) .‬بيهقسسى؛‬
‫ت أ ََبا هَُري َْرة َ فَ َ‬
‫حسقّ الل ّسهِ وَ َ‬
‫ه وَأد ّ َ‬
‫حسقّ َ‬
‫ق الل ّس َ‬
‫ما فَأت َي ْ ُ‬
‫ل ي َوْم ٍ د ِْرهَ ً‬
‫ل ات ّ ِ‬
‫سنن الكبرى؛ حديث ‪(15788‬‬
‫سیدنا عبدالرح ٰمن )بن عوف( رضی اللہ عنہ کے سابقہ غلم در ہم کہتسے ہیسسں‪" ،‬میسسرے آقسسا نسے‬
‫مجھ پر روزانہ ایک درہم کا خراج مقرر کیا تھا۔ )ایک دن( میسسں نسے یسہ در ہم سسسیدنا ابسسوھریرہ‬
‫رضی اللہ عنہ کو پیش کیا تو انہوں نے فرمایا‪" ،‬اللہ سے ڈرو اور اللہ کسا اور اپنسے آقسا کسا حسسق‬
‫)انہی کو( ادا کرو۔"‬

‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم جس کسی کو اپنے غلم پر زیادتی کرتے ہوئے دیکھتے تو‬
‫فورا ً اسے اچھا سلوک کرنے کی تلقین کیا کرتے تھے۔‬
‫‪88‬‬

‫و روی ان اباھریرہ رای رجل راکبا و غلمہ یسعی خلفہ‪ ،‬فقال‪ :‬یا عبداللہ احملہ‪ ،‬فانہ اخسسوک‪ ،‬و‬
‫روحک مثل روحہ۔ )بغوی‪ ،‬شرح السنۃ‪ ،‬کتاب النکاح(‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ نے ایک شخص کو دیکھا کہ وہ سوار ہے اور اس کا غلم اس کے‬
‫پیچھے دوڑ رہا ہے۔ انہوں نے فرمایا‪" ،‬اے عبداللہ! اسے بھی سوار کرو۔ یہ تمہارا بھائی ہی ہے۔‬
‫تمہارے اندر جو روح ہے وہ بھی اسی کی روح کی طرح ہی ہے۔‬

‫غلموں پر ہر قسم ک ے تشدد کی‬
‫ممانعت‬
‫تشدد زد ہ غلموں کی آزادی کا قانون‬
‫اسلم سے پہلے کے زمانے میں غلموں پر جسمانی و نفسیاتی تشدد عسسام ت ھا۔ غلم‬
‫کو مکمل طور پر آقا کی ملکیت تصور کیا جاتا اور اسے اپنے غلم کو قتل کر دینسسے‬
‫کا حق بھی حاصل تھا۔ رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے ب ہت سسسختی سسے‬
‫غلموں پر تشدد کی ممانعت فرمائی اور حکم دیا کہ اگر کوئی اپن سے غلم کسسو تھپسسڑ‬
‫بھی مار دے تو اس پر لزم ہے کہ وہ اس غلم کو آزاد کر دے۔‬
‫وحدثنا محمد بن المثنى وابن بشسسار )واللفسسظ لبسسن المثنسسى(‪ .‬قسسال‪ :‬حسسدثنا محمسسد بسسن‬
‫جعفر‪ .‬حدثنا شعبة عن فراس‪ .‬قال‪ :‬سمعت ذكوان يحدث عن زاذان؛ أن ابسسن عمسسر‬
‫دعا بغلم له‪ .‬فرأى بظهره أثرا‪ .‬فقال له‪ :‬أوجعتك؟ قال‪ :‬ل‪ .‬قال‪ :‬فأنت عسستيق‪ .‬قسسال‪:‬‬
‫ثم أخذ شيئا من الرض فقال‪ :‬ما لي فيه من الجر ما يزن هذا‪ .‬إني سسسمعت رسسسول‬
‫الله صلى الله عليه وسلم يقول )من ضرب غلما له‪ ،‬حسسدا لسسم يسسأته‪ ،‬أو لطمسسه‪ ،‬فسسإن‬
‫كفارته أن يعتقه(‪) .‬مسلم کتاب اليمان‪ ،‬حديث ‪(4299‬‬
‫زاذان بیان کرتے ہیں کہ سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما نے اپنے ایک غلم کسسو بلیسسا۔ اس کسسی‬
‫پیٹھ پر چوٹ کا نشان تھا۔ آپ نے اس سے پوچھا‪" ،‬کیسسا میسسں نسے تمہیسسں تکلیسسف دی ہے؟" وہ‬
‫بول‪" ،‬جی نہیں۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬تم آزاد ہو۔" اس کسے بعسسد زمیسسن سسے کسسوئی چیسسز )لکسسڑی‬
‫وغیرہ( اٹھا کر فرمایا‪" ،‬مجھے اس کے وزن کے برابر بھی اجر نہیں مل کیونکہ میں نے رسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو فرماتے سنا ہے‪' ،‬جو بھی غلم کو بغیر کسی جرم ک سے سسسزا‬
‫دے یا اسے تھپڑ مار دے تو اس کا کفارہ یہ ہے کہ وہ اسے آزاد کر دے۔' "‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم غلموں پر تشدد کے معاملے میں نہایت حساس‬
‫تھے۔ آپ نے غلم کو مارنے پر آزاد نہ کرنے والے کو بتایسسا ک سہ اس صسسورت میسسں اس سے‬
‫جہنم کی آگ کے لئے تیار رہنا چاہیے۔‬
‫وحدثنا أبو كريب محمد بسسن العلء‪ .‬حسسدثنا أبسسو معاويسسة‪ .‬حسسدثنا العمسسش عسسن إبراهيسسم‬
‫التيمي‪ ،‬عن أبيه‪ ،‬عن أبي مسعود النصاري‪ .‬قال‪ :‬كنت أضرب غلمسسا لسسي‪ .‬فسسسمعت‬
‫من خلفي صوتا )اعلم‪ ،‬أبا مسعود! لله أقدر عليك منك عليه( فالتفت فإذا هو رسول‬
‫الله صلى الله عليه وسلم‪ .‬فقلت‪ :‬يا رسول الله! هو حر لوجه الله‪ .‬فقال )أما لو لسسم‬
‫تفعل‪ ،‬للفحتك النار‪ ،‬أو لمستك النار(‪) .‬مسلم کتاب اليمان‪ ،‬حديث ‪(4308‬‬
‫سیدنا ابو مسعود انصاری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں )کسی بات پر( اپنسے غلم کسو‬
‫مار رہا تھا۔ میں نے اپنے پیچھے سے آواز سنی‪" ،‬ابو مسعود! جسسان لسو‪ ،‬اللسہ تسم پسر اس سسے‬
‫زیادہ قدرت رکھتا ہے‪ ،‬جتنی تم اس غلم پر قدرت رکھتے ہو۔" میں ن سے مسسڑ کسسر دیک ھا تسسو وہ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم تھے۔ میں نے عرض کیا‪" ،‬یا رسسول اللسہ! یسہ اللسہ کسے لئے‬
‫آزاد ہے۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬اگر تم ایسا نہ کرتے تو )جہنم کی( آگ تمہیں جل ڈالتی یا فرمایا کہ‬
‫تمہیں چھو لیتی۔"‬
‫اسی حدیث کی دیگر روایتوں میں یہ بھی ہے کہ حضور صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسسی بسسات‬
‫سن کر ابو مسعود رضی اللہ عنہ کے ہاتھ سے وہ چھڑی گسسر گئی جسسس سسے وہ غلم کسسو مسسار‬
‫‪89‬‬

‫رہے تھے اور انہوں نے آئندہ کسی غلم کو مارنے سے توبہ کر لی۔‬

‫ایک اور حدیث میں ہے‪:‬‬
‫ما له أقيد منه يوم القيامة )جمع الجوامع(‬
‫من ضرب مملوكه ظل ً‬
‫جس نے اپنے غلم پر ظلم کرتے ہوئے اسے مارا تو اس سے قیامت کے دن بدلہ لیا جائے گا۔‬

‫ابن القیم ایسا ہی ایک واقعہ نے بیان کیا ہے‪:‬‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا عبد الرزاق أخبرني معمر أن ابن جريسسج أخسسبره عسسن‬
‫عمرو بن شعيب عن أبيه عن عبد الله بن عمرو بن العسساص أن زنباعسسا أبسسا روح وجسسد‬
‫غلما له مع جارية له فجدع أنفه وجبه فأتى النبي صلى الله عليسسه وسسسلم فقسسال مسسن‬
‫فعل هذا بك قال زنباع فدعاه النبي صلى الله عليه وسلم فقال ما حملسسك علسى هسذا‬
‫فقال كان من أمره كذا وكذا فقال النبي صلى الله عليه وسلم للعبد إذهب فأنت حر‬
‫فقال يا رسول الله فمولى من أنا قال مولى الله ورسسسوله فأوصسسى بسسه رسسسول اللسسه‬
‫صلى الله عليه وسلم المسلمين قال فلما قبض رسول الله صلى اللسسه عليسسه وسسسلم‬
‫جاء إلى أبي بكر فقال وصية رسول الله صلى الله عليه وسلم قال نعم نجري عليك‬
‫النفقة وعلى عيالك فأجراها عليه حتى قبض أبو بكر فلما استخلف عمر جسساءه فقسسال‬
‫وصية رسول الله صلى الله عليه وسلم قال نعم أين تريد قال مصر فكتب عمر إلسسى‬
‫صاحب مصر أن يعطيه أرضا يأكلها‪) .‬ابن قیم‪ ،‬اعلم الموقعین(‬
‫سیدنا عبداللہ بن عمرو بن عاص رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیسں کسہ ابسو روح زنبساع نسے اپنسے‬
‫ایک غلم کو ایک لونڈی کے ساتھ مشغول پایا تو انہوں نے اس کی ناک کسساٹ دی۔ اس سے نسسبی‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے پاس لیا گیا۔ آپ نے پوچھا‪" ،‬یہ کس نے کیا ہے؟" بتایا گیا‪" ،‬زنباع‬
‫نے۔" آپ نے زنباع کو بلیا اور فرمایا‪" ،‬تم سے ایسا کرنے کے لئے کس نے کہا ت ھا؟" اس ک سے‬
‫بعد آپ نے غلم سے فرمایا‪" ،‬تم تو جاؤ‪ ،‬تم آزاد ہو۔" اس نے پوچھا‪" ،‬یا رسسسول الل سہ! میسسری‬
‫ولء کا رشتہ کس سے قائم ہو گا؟" فرمایسسا‪" ،‬الل سہ اور اس ک سے رسسسول س سے۔" اس ک سے بعسسد‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس کے بارے میں مسلمانوں کو وصیت فرمائی۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی وفات کے بعد وہی غلم سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ‬
‫کے پاس آیا اور حضور کی وصیت بیان کی۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬ہاں‪ ،‬ہم تمہارے اور تم ہارے ا ہل‬
‫و عیال کے اخراجات کے لئے وظیفہ جاری کریں گے۔" اس کے بعد انہوں نے ی سہ وظیف سہ جسساری‬
‫کر دیا۔ جب ابوبکر رضی اللہ عنہ فوت ہوئے اور سیدنا عمر رضی اللہ عنہ خلیفہ بنے تو وہ پھر‬
‫ان کے پاس آیا اور یہی وصیت بیان کی۔ انہوں نے فرمایا‪" ،‬بالکل ٹھیک! تم کہاں جانسسا چسساہتے‬
‫ہو؟" وہ کہنے لگا‪" ،‬مصر میں۔" سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے مصر کے گورنر کو حکسسم جسساری‬
‫کیا کہ اسے اتنی )سرکاری( زمین دے دی جائے جسے کاشت کر ک سے وہ اپن سے ک ھانے پین سے کسسا‬
‫بندوبست کر سکے۔‬

‫تشدد زد ہ غلموں س ے متعلق صحاب ہ کی حساسیت‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی تربیت کا اثر تھا کہ آپ کے صسسحابہ ب ھی اس‬
‫معاملے میں بہت حساس تھے۔‬
‫وحدثنا عبدالوارث بن عبدالصمد‪ .‬حدثني أبي‪ .‬حدثنا شعبة‪ .‬قال‪ :‬قال لسسي محمسسد بسسن‬
‫المنكدر‪ :‬ما اسمك؟ قلت‪ :‬شعبة‪ .‬فقال محمد‪ :‬حدثني أبو شعبة العراقي عسسن سسسويد‬
‫بن مقرن؛ أن جاريسسة لسسه لطمهسسا إنسسسان‪ .‬فقسسال لسسه سسسويد‪ :‬أمسسا علمسست أن الصسسورة‬
‫محرمة؟ فقال‪ :‬لقد رأيتني‪ ،‬وإني لسابع إخوة لي‪ ،‬مسع رسسول اللسه صسلى اللسه عليسه‬
‫وسلم‪ .‬وما لنا خادم غير واحد‪ .‬فعمد أحدنا فلطمسسه‪ .‬فأمرنسسا رسسسول اللسسه صسسلى اللسسه‬
‫عليه وسلم أن نعتقه‪) .‬مسلم کتاب اليمان‪ ،‬حديث ‪(4304‬‬
‫سیدنا سوید بن مقرن رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ ایک لونڈی کو اس کے آقسسا ن سے تھپسسڑ‬
‫مارا۔ سوید اس سے کہنے لگے‪" ،‬کیا تمہیں علم نہیں ہے کہ چہرے پر مارنسسا حسسرام ہے؟ مج ھے‬
‫دیکھو‪ ،‬میرے سات بھائی تھے اور ہم سب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ک سے سسساتھی‬
‫تھے۔ ہمارے پاس صرف ایک غلم تھا۔ ہم میں سے ایک نے اسے تھپڑ مارا تو رسول اللہ صلی‬
‫‪90‬‬

‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اسے آزاد کرنے کا حکم دیا۔‬

‫سیدنا سوید رضی اللہ عنہ تو اس معاملے میں اتنے حساس تھے کہ صحیح مسلم کسے‬
‫اسی باب کی ایک اور روایت کے مطابق ان کے بیٹے نے اپنے غلم کو مارا تسسو ان ہوں‬
‫نے غلم سے کہا کہ اپنا بدلہ لے لو۔ اس نے معاف کر دیا تو سیدنا سوید رضی اللہ عنہ‬
‫نے بیٹے کو اس غلم کو آزاد کرنے کا حکم دیا۔ یہی معاملہ خلفاء راشدین کے زمسسانے‬
‫میں تھا۔ اگر غلم پر جسمانی تشدد کیا جاتا تو خلفاء راشدین اس غلم کو آزاد کر‬
‫دیا کرتے تھے۔‬
‫َ‬
‫َ‬
‫وحدث َِني مال ِ ٌ َ‬
‫خ ّ‬
‫ها ب ِن َسساٍر‪ ،‬أ َْو‬
‫ن ال ْ َ‬
‫س سي ّد ُ َ‬
‫ه وَِليد َة ٌ قَ سد ْ َ‬
‫ه‪:‬أ ّ‬
‫َ َ ّ‬
‫ض سَرب ََها َ‬
‫ب أت َت ْ ُ‬
‫ن عُ َ‬
‫ه ب َل َغَ ُ‬
‫ك‪ ،‬أن ّ ُ‬
‫َ‬
‫طا ِ‬
‫مَر ب ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قَها‪) .‬موطاء مالک‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2251‬‬
‫صاب ََها ب َِها‪ ،‬فأع ْت َ َ‬
‫أ َ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے پاس ایک لونڈی لئی گئی جسے اس کے مالک ن سے جلسستی ہوئی‬
‫)لکڑی وغیرہ( سے مارا تھا۔ آپ نے اسے آزاد کر دیا۔ )اس کے دوسرے طرق میں یہ ب ھی ہے‬
‫کہ مالک کو انہوں نے سو کوڑے کی سزا بھی دی۔ مستدرک حاکم‪ ،‬حدیث ‪(2856‬‬

‫ایسا ہی ایک واقعہ سیدنا علی رضی اللہ عنہ کے دور خلفت میں پیسسش آیسا جسسس پسسر‬
‫انہوں نے اس غلم کو آزاد کر دیا۔ )مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬حدیث ‪(28619‬‬

‫غلم پر نفسیاتی تشدد کی ممانعت‬
‫غلم پر صرف جسمانی تشدد کی ممانعت ہی نہ تھی بلکہ اسے ذہنی اذیت دینے سے‬
‫بھی رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے منع فرمایا۔‬
‫حدثنا مسدد‪ :‬حدثنا يحيى بن سعيد‪ ،‬عن فضيل بن غزوان‪ ،‬عن ابن أبي نعم‪ ،‬عن أبي‬
‫هريرة رضي الله عنه قال‪ :‬سمعت أبا القاسم صلى اللسسه عليسسه وسسسلم يقسسول‪) :‬مسسن‬
‫قذف مملوكه‪ ،‬وهو بريء مما قال‪ ،‬جلد يوم القيامة‪ ،‬إل أن يكون كما قال(‪) .‬بخاری‪،‬‬
‫كتاب الحدود‪ ،‬حديث ‪(6858‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ انہوں نے ابوالقاسم صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫کو فرماتے سنا ہے‪" ،‬جس نے اپنے غلم پر الزام لگایا اور وہ اس الزام سے بری ہے‪ ،‬تو اسسسے‬
‫قیامت کے دن کوڑے لگائے جائیں گے۔ سوائے اس کے کہ اس نے سچ کہا ہو" )یسا پ ھر وہ دنیسسا‬
‫میں اپنے جرم کی سزا بھگت لے۔(‬

‫اس حدیث کی تشریح کرتے ہوئے محدث ابن جوزی لکھتے ہیں‪:‬‬
‫اعلم أن المملوك عبد لله كما أن المالك عبد له والحق عز وجل عادل فإذا لم يجلسسد‬
‫لموضع قذفه له في الدنيا من جهة استعلئه عليه بالملكة جلد له فسسي القيامسسة‪) .‬ابسسن‬
‫جوزی‪ ،‬کشف المشکل من حديث الصحيحين(‬
‫یہ بات جان رکھیے کہ غلم بھی اسی طرح اللہ کا بندہ ہے جیسسسا ک سہ مالسسک۔ الل سہ تعسسالی عسسدل‬
‫کرنے وال ہے۔ اگر کسی شخص کو اس دنیا میں اپنے غلم پر غلبسے کسے بسساعث سسسزا نسہ مسسل‬
‫سکی تو اسے اس جرم کی سزا میں قیامت کے دن کوڑے لگائے جائیں گے۔‬

‫غلموں ک ے ازدواجی حقوق‬
‫غلموں کی شادی کر دین ے کا حکم‬
‫قرآن مجید میں اللہ تعالی نے خاص طور پر یہ غلموں کے مالکوں کو یہ حکم دیا کسسہ‬
‫وہ اپنے غلموں اور لونڈیوں کی شادیاں کر دیں۔ اگر وہ ایسا نہ کریں گے اور اس کے‬
‫نتیجے میں اگر یہ غلم اور لونڈیاں بدکاری پر مجبور ہوئے تو ان کے اس گناہ کسے ذمسہ‬
‫دار ان کے مالکان ہوں گے۔ ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫‪91‬‬

‫َ‬
‫َ‬
‫ن يَ ُ‬
‫ه‬
‫كون ُسسوا فُ َ‬
‫ن ِ‬
‫صال ِ ِ‬
‫ن ِ‬
‫مى ِ‬
‫م إِ ْ‬
‫وَأنك ِ ُ‬
‫م الل ّس ُ‬
‫ق سَراءَ ي ُغْن ِهِ س ْ‬
‫مائ ِك ُ ْ‬
‫م وَإ ِ َ‬
‫عَباد ِك ُ ْ‬
‫من ْك ُ ْ‬
‫حوا الَيا َ‬
‫م َوال ّ‬
‫م ْ‬
‫حي َ‬
‫م ۔ )قرآن ‪(24:32‬‬
‫ه َوا ِ‬
‫ِ‬
‫ن فَ ْ‬
‫سعٌ ع َِلي ٌ‬
‫ضل ِهِ َوالل ّ ُ‬
‫م ْ‬
‫تم میں سے جو )مرد و عورت( مجرد ہوں‪ ،‬ان کی شادیاں کسسر دیسسا کسسرو اور تم ہارے لون سڈی‬
‫غلموں میں سے جو صالح ہوں ان کے نکاح بھی کر دیا کرو۔ اگر وہ غریب ہوں تو اللہ انہیسسں‬
‫اپنے فضل سے غنی کر دے گا۔ اللہ بڑی وسعت اور علم وال ہے۔‬

‫یہاں صالحین کے لفظ کے استعمال کی وجہ یہ تھی کہ اسلم سے پہل سے ک سے دور میسسں‬
‫غلموں اور لونڈیوں کی تعلیم و تربیت پر زیادہ توجہ نہیسں دی جساتی ت ھی جسس کسے‬
‫باعث ان میں اخلقی انحطاط اور بدکاری پائی جاتی تھی۔ اللہ تعالی نے مسلمانوں‬
‫کے غریب لوگوں کو جو آزاد خواتین کے م ہر ادا کرن سے کسسی طسساقت ن سہ رکھت سے ت ھے‪،‬‬
‫ترغیب دلئی کہ وہ لونڈیوں سے نکاح کر لیں۔‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‬
‫ت فَ ِ‬
‫من َسسا ِ‬
‫مؤ ْ ِ‬
‫صَنا ِ‬
‫ست َط ِعْ ِ‬
‫م ْ‬
‫ن َينك ِ َ‬
‫م ط َوْل ً أ ْ‬
‫م يَ ْ‬
‫مسسان ُك ُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َس ْ‬
‫مسا َ‬
‫ن َ‬
‫ت ال ْ ُ‬
‫ح ال ْ ُ‬
‫من ْك ُ ْ‬
‫ن لَ ْ‬
‫وَ َ‬
‫ح َ‬
‫مس ْ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫م ِ‬
‫مَنا ِ‬
‫مؤ ْ ِ‬
‫ِ‬
‫ض فانك ِ ُ‬
‫م ب َعْ ُ‬
‫ضك ْ‬
‫مان ِك ْ‬
‫م ب ِِإي َ‬
‫ه أع ْل ُ‬
‫ت َوالل ُ‬
‫م ال ُ‬
‫ن فت ََيات ِك ْ‬
‫ن أهْل ِِهسس ّ‬
‫ن ِبسسإ ِذ ْ ِ‬
‫حوهُ ّ‬
‫م ْ‬
‫م ْ‬
‫ن ب َعْ ٍ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن۔ )قسسرآن‬
‫تأ ْ‬
‫مت ّ ِ‬
‫خ سذا ِ‬
‫حا ٍ‬
‫ص سَنا ٍ‬
‫خس َ‬
‫سسسافِ َ‬
‫م ْ‬
‫معُْرو ِ‬
‫نأ ُ‬
‫م َ‬
‫ت َول ُ‬
‫ت غي ْسَر ُ‬
‫ف ُ‬
‫ن ب ِسسال َ‬
‫ح َ‬
‫دا ٍ‬
‫جوَرهُ ّ‬
‫َوآُتوهُ ّ‬
‫‪(4:25‬‬
‫جو شخص تم میں سے اتنی استطاعت نہ رکھتا ہو کہ وہ آزاد مسلمان خواتین سے شادی کر‬
‫سکے تو تمہاری ان لڑکیوں میں سے کسی سے نکاح کر لے جو تمہاری ملکیت میں ہیسسں اور‬
‫مومن ہیں۔ اللہ تمہارے ایمان کا حال بہتر جانتا ہے لہذا ان کے سرپرستوں کی اجازت سے ان‬
‫سے نکاح کر لسسو اور معسسروف طریقسے سسے ان کسے م ہر ادا کسسرو‪ ،‬تسساکہ وہ حصسسار نکسساح میسسں‬
‫محفوظ ہو کر رہیں اور آزاد شہوت رانی اور چوری چھپے آشنائی سے بچ سکیں۔‬

‫اس سے کسی کو یہ خیال پیدا ہو سکتا ہے کسہ لونسڈیوں سسے شسسادی کسے لئے ان کسے‬
‫مالک کی اجازت لینا ضروری تھا۔ دین اسلم نے نہ صرف لونڈیوں بلک سہ آزاد خسسواتین‬
‫کو بھی یہی کہا ہے کہ وہ اپنے سرپرستوں کی اجازت سے شادی کریسسں کیسسونکہ نکسساح‬
‫محض دو افراد کے تعلق کا نام نہیں ہے بلکسہ دو خانسسدانوں کسے ملپ کسسا نسسام ہے اور‬
‫ایسسسا کرنسے میسسں پسسورے خانسسدان کسسو شسسریک ہونسسا چسساہیے۔ آزاد اور غلم خسسواتین کسے‬
‫سرپرستوں کو بھی یہ تاکید کی گئی کہ وہ اس معاملے میں قطعی کوئی رکسساوٹ ن سہ‬
‫ڈالیں اور اگر وہ ایسا کریں تو خاتون اس معاملے کو عدالت میں لے جا سکتی ہے۔‬

‫طلق کا حق‬
‫شادی کرنے کے بعد طلق کا حق صرف اور صرف غلم کو ہی دیا گیا۔ کسی مالسسک‬
‫کو اس بات کی اجازت نہ تھی کہ وہ غلم کو اپنسسی بیسسوی کسسو طلق دین سے پسسر مجبسسور‬
‫کرے۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے دور میں یہی عمل تھا۔‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬مس َ‬
‫َ‬
‫مسَر َ‬
‫قسو ُ‬
‫ن‬
‫ن يَ ُ‬
‫ن ل ِعَْبسد ِهِ أ ْ‬
‫ن أذ ِ َ‬
‫كسا َ‬
‫ن َنافٍِع ‪ :‬أ ّ‬
‫مال ِ ٍ‬
‫وَ َ‬
‫ن عُ َ‬
‫ن َ‬
‫َ ْ‬
‫ن ع َب ْد َ الل ّهِ ْبس َ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫حد ّث َِني ع َ ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫يٌء۔ )موطسساء مالسسک‪ ،‬کتسساب‬
‫س‬
‫ش‬
‫ه‬
‫س‬
‫ق‬
‫ل‬
‫ط‬
‫ن‬
‫س‬
‫م‬
‫ه‬
‫ر‬
‫س‬
‫ي‬
‫غ‬
‫د‬
‫س‬
‫ي‬
‫ب‬
‫س‬
‫س‬
‫ي‬
‫ل‬
‫د‪،‬‬
‫ب‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ا‬
‫د‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ق‬
‫ل‬
‫ط‬
‫فال‬
‫ح‪،‬‬
‫ك‬
‫ِ ِ‬
‫ي َن ْ ِ َ‬
‫ْ‬
‫ُ َِ ِ َ ْ ِ ْ َ َِ ِ ْ ِ ِ ِ ْ‬
‫الطلق‪ ،‬حديث ‪(1676‬‬
‫سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ فرمایا کرتے تھے‪" ،‬جس نے اپن سے غلم کسسو شسسادی کرن سے‬
‫کی اجازت دے دی‪ ،‬تو اب طلق کا معاملہ غلم کے ہاتھ ہی میں ہے۔ اس کے علوہ کسسسی اور‬
‫کو طلق کے معاملے میں کوئی اختیار نہیں۔"‬

‫غلموں کو شاید عرب کی تاریخ میں پہلی مرتبہ آزاد خاتون سے شادی کا حق ب ھی‬
‫دے دیا گیا تھا۔ وہ عرب جو ہاتھ سے کام کرنے والے کسی شخص سے اپنسسی بیسسٹی یسسا‬
‫بہن کا نکاح کرنے کو توہین سمجھتے تھے‪ ،‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم کسسی‬
‫تعلیمات کے تحت ایسا کرنے پر تیسسار ہو گئے۔ نسہ صسسرف نکسساح‪ ،‬بلکسہ آزاد خساتون کسسو‬
‫طلق دینا بھی ان کے لئے ممکن ہو گیا تھا۔ ایسا ضرور تھا کہ غلم کو طلق دینے کا‬
‫حق دو مرتبہ دیا گیا جبکہ آزاد خاوند کو یہ حق تین مرتبہ حاصل تھا۔‬
‫‪92‬‬

‫َ‬
‫كاَتبسسا ً َ‬
‫م َ‬
‫ن‬
‫ن نُ َ‬
‫كسسا َ‬
‫ساٍر‪ :‬أ ّ‬
‫ما َ‬
‫مال ِ ٍ‬
‫حد ّث َِني ي َ ْ‬
‫َ‬
‫ن يَ َ‬
‫ن ُ‬
‫فْيعا ً ُ‬
‫سل َي ْ َ‬
‫ن َ‬
‫ن أِبي الّزَناِد‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫حَيى‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن بْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ة‪,‬‬
‫حسّر ٌ‬
‫م َ‬
‫مسَرأة ٌ ُ‬
‫ت تَ ْ‬
‫ل ّ‬
‫م َ‬
‫ها ْ‬
‫حَتس ُ‬
‫ي صلى اللسه عليسه وسسسلم أوْ ع َب ْسسدا لَهسا‪ ،‬كسان َ ْ‬
‫سل َ‬
‫ة َزوِْج الن ّب ِ ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ي‬
‫فَطل َ‬
‫ي صلى الله عليه وسلم أ ْ‬
‫مَره ُ أْزَوا ُ‬
‫م أَراد َ أ ْ‬
‫جعََها‪ ،‬فأ َ‬
‫ن ي َُرا ِ‬
‫ن‪ ،‬ث ّ‬
‫ن َ ي َأت ِ َ‬
‫ج الن ّب ِ ّ‬
‫قَها اثن َت َي ْ ِ‬
‫َ‬
‫عن ْد َ الد َّرج آ ِ ً‬
‫ن ذ َل ِ َ‬
‫ما‪،‬‬
‫ن عَ ّ‬
‫ه ِ‬
‫ن َثاب ِ ٍ‬
‫ك‪ ،‬فَل َ ِ‬
‫فا َ‬
‫ما َ‬
‫ت‪ ،‬فَ َ‬
‫ن‪ ،‬فَي َ ْ‬
‫سسأل َهُ َ‬
‫قي َ ُ‬
‫سأل َ ُ‬
‫ع ُث ْ َ‬
‫ه عَ ْ‬
‫ن بْ َ‬
‫خذا ب ِي َد ِ َزي ْد ِ ب ْ ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫ت ع َلي ْس َ‬
‫ت ع َلي ْس َ‬
‫ك‪).‬موطسساء مالسسک‪ ،‬کتسساب الطلق‪،‬‬
‫ميعا فَ َ‬
‫ج ِ‬
‫ك‪َ ،‬‬
‫قال َ ‪َ :‬‬
‫َفاب ْت َد ََراه ُ َ‬
‫مس ْ‬
‫حُر َ‬
‫مس ْ‬
‫حُر َ‬
‫حديث ‪(1672‬‬
‫سلیمان بن یسار کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زوج سہ ام سسسلمہ رضسسی‬
‫اللہ عنہا کے ایک غلم یا مکاتب نفیع تھے۔ ان کے نکاح میں ایک آزاد خاتون تھیسسں۔ ان ہوں ن سے‬
‫انہیں دو مرتبہ طلق دے دی اور پھر رجوع کرنے کا ارادہ کیا۔ نبی صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم‬
‫کی ازواج نے معاملے کو سیدنا عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ )جو کہ خلیفہ تھے( کی عسسدالت‬
‫میں لے جانے کا حکم دیا۔ وہ ان سے فیصلہ کروانے کے لئے گئے تو ان کی ملقسسات سسسیڑھیوں‬
‫کے نزدیک ان سے ہوئی۔ اس وقت وہ زید بن ثابت رضی اللہ عنہ کے ساتھ جلدی جلدی کہیسں‬
‫جا رہے تھے۔ ان سے پوچھا تو وہ دونوں کہنے لگے‪" ،‬وہ اب تمہارے لئے حرام ہے‪ ،‬وہ اب تم ہارے‬
‫لئے حرام ہے۔"‬

‫لون ڈیوں ک ے لئ ے طلق کا حق‬
‫لونڈیوں کو اس بات کا حق دیا گیا کہ جب انہیں آزادی ملے تو اس موقع پر وہ چاہیں‬
‫تو حالت غلمی میں کئے گئے اپنے سابقہ نکاح کو برقرار رکھیسسں یسسا اس سے فسسسخ کسسر‬
‫دیں۔ اس حق کو "خیار عتق" کہا جاتا ہے۔‬
‫حدثنا محمد‪ :‬أخبرنا عبد الوهاب‪ :‬حدثنا خالد‪ ،‬عن عكرمسسة‪ ،‬عسسن ابسسن عبسساس‪ :‬أن زوج‬
‫بريرة عبد أسود يقال له مغيث‪ ،‬كأني أنظر إليه يطوف خلفها يبكسسي ودمسسوعه تسسسيل‬
‫على لحيته‪ ،‬فقال النبي صلى الله عليه وسلم لعباس‪) :‬يا عباس‪ ،‬أل تعجب مسسن حسسب‬
‫مغيث بريرة‪ ،‬ومسن بغسسض بريسسرة مغيثسا(‪ .‬فقسال النسسبي صسلى اللسه عليسه وسسسلم‪) :‬لسسو‬
‫راجعته(‪ .‬قالت يا رسول الله تأمرني؟ قال‪) :‬إنما أنا أشفع(‪ .‬قالت‪ :‬ل حاجة لي فيسسه‪.‬‬
‫)بخاری‪ ،‬کتاب الطلق‪ ،‬حديث ‪(5283‬‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ بریرہ کے خاوند ایسسک سسسیاہ فسام غلم ت ھے‬
‫جن کا نام مغیث تھا۔ میں گویا اب بھی دیکھ رہا ہوں کہ وہ بریرہ کے پیچھے پیچھے روتے ہوئے‬
‫پھر رہے ہیں اور ان کی داڑھی آنسوؤں سے تر ہو رہی ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم ن سے‬
‫سیدنا عباس رضی اللہ عنہ سے فرمایا‪" ،‬عباس! کیا آپ کو حیرت نہیں ہوتی کہ مغیث بریسسرہ‬
‫سے کس قدر محبت کرتا ہے اور وہ اس سسے کتنسسی نفسسرت کرتسسی ہے۔" آپ نسے بریسسرہ سسے‬
‫فرمایا‪" ،‬کاش تم علیحدگی کا یہ فیصلہ بدل دو۔" وہ پوچھنے لگیں‪" ،‬یا رسول اللہ! کیا یسسہ آپ‬
‫کا حکم ہے؟" آپ نے فرمایا‪" ،‬نہیں میں تو سفارش کر رہا ہوں۔" وہ بولیں‪" ،‬پ ھر مج ھے اس‬
‫کی ضرورت نہیں ہے۔"‬

‫اس حدیث سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ دور رسالت میں کس حد تسسک لوگسسوں کسسو آزادی‬
‫حاصل تھی کہ رسسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم ب ھی انہیسں ان کسے حقسوق و‬
‫اختیارات کے معاملے میں مجبور نہ کیا کرتے تھے بلکہ زیادہ سے زیادہ مشسسورہ دے دیسسا‬
‫کرتے تھے۔‬
‫اس حدیث سے بعض فقہاء نے یہ نکتہ رسی کرنے کی کوشش کی ہے ک سہ لون سڈی‬
‫کو یہ اختیار اسی صورت میں ہوگا اگر اس کا شوہر غلم ہو۔ اگر شسسوہر آزاد ہو تسسو‬
‫اسے یہ اختیار حاصل نہ ہو گا۔ یہ نقطہ نظر درسسست نہیسسں۔ حسسدیث بریسسرہ ک سے مختلسسف‬
‫طرق کو اگر اکٹھا کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ بریرہ کے شوہر مغیث سیاہ فام غلم‬
‫تھے لیکن بریرہ کی آزادی کے وقت وہ پہلے ہی آزاد ہو چکے تھے۔‬
‫ثنا الحسين بن إسماعيل نا هارون بن إسحاق نا عبدة عن سعيد عن أبي معشر عسسن‬
‫إبراهيم عن السود عن عائشة أن زوج بريرة كان حرا يوم أعتقت )دارقطنی‪ ،‬کتسساب‬
‫العتق(‬
‫‪93‬‬

‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ جس دن بریرہ آزاد ہوئیں‪ ،‬ان کے خاوند پہلے ہی‬
‫آزاد ہو چکے تھے۔‬

‫خاندان کو اکٹ ھا رک ھن ے کا حق‬
‫غلم خاندانوں کو یہ حق بھی دے دیا گیسسا کسہ ان کسسی کسسسی قسسسم کسسی منتقلسسی کسسی‬
‫صورت میں ان کے خاندان کو الگ نہ کیا جائے گا۔‬
‫حدثنا عمر بن حفص بن عمر الشيباني أخبرنا عبد الله بسسن وهسسب أخسسبرني حيسسي عسسن‬
‫أبي عبد الرحمن الحبلي عن أبي أيسسوب قسسال سسسمعت رسسسول اللسسه صسسلى اللسسه عليسسه‬
‫وسلم يقول من فرق بين والدة وولدها فرق الله بينه وبين أحبتسسه يسسوم القيامسسة۔ قسسال‬
‫أبو عيسى وفي الباب عن علي وهذا حديث حسن غريب۔ والعمل على هذا عند أهسسل‬
‫العلم من أصحاب النبي صلى الله عليه وسلم وغيرهم كرهسسوا التفريسسق بيسسن السسسبي‬
‫بين الوالدة وولدها وبين الولد والوالد وبين الخسسوة ۔ )ترمسسذی‪ ،‬کتسساب الجهسساد‪ ،‬حسسديث‬
‫‪(1566‬‬
‫سیدنا ابو ایوب انصاری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫نے ارشاد فرمایا‪" ،‬جس نے ماں اور اس کے بچے کو الگ کیا‪ ،‬اللہ قیامت کے دن اس کو اس‬
‫کے پیاروں سے الگ کر دے گا۔"‬
‫ترمذی کہتے ہیں‪" ،‬یہ حدیث حسن غریب درجے کی ہے اور اس کی روایت سیدنا علی رضی‬
‫اللہ عنہ نے بھی کی ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے علماء صحابہ اور دیگر ا ہل علسم کسا‬
‫عمل بھی یہی ہے۔ وہ اس بات کو سخت ناپسند کرتے تھے کہ غلموں میں ماں اور بچے‪ ،‬باپ‬
‫اور بچے اور بہن بھائیوں کو علیحدہ کر دیا جائے۔‬

‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن‬
‫ن ال ْ َ‬
‫س ْ‬
‫قا ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن ع َب ْسد ِ الّر ْ‬
‫ن َ‬
‫فَيا ُ‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬حد ّث ََنا ُ‬
‫ح َ‬
‫ن ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ْ‬
‫مس ِ‬
‫سسم ِ ب ْس ِ‬
‫جسساب ِرٍ ‪ ،‬ع َس ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫سو ُ‬
‫سُعودٍ ‪ ،‬قا َ‬
‫ي‬
‫أ َِبيهِ ‪ ،‬ع َ‬
‫ل ‪ :‬كا َ‬
‫ن اب ْ‬
‫ي ِبال ّ‬
‫ن َر ُ‬
‫م ْ‬
‫ن َ‬
‫ل اللهِ صلى الله عليه وسلم إَذا أت ِ َ‬
‫سسسب ْ ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ل ال ْبيت جميعا ك َراهي َ َ‬
‫َ‬
‫أ َع ْ َ‬
‫م‪) .‬ابسسن ابسسي شسسيبة؛ حسسديث‬
‫ن يُ َ‬
‫ةأ ْ‬
‫َ َِ‬
‫طى أهل البيت أهْ َ َ ْ ِ َ ِ ً‬
‫فّرقَ ب َي ْن َهُ ْ‬
‫‪(23265‬‬
‫سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‬
‫جب بھی جنگی قیدیوں کی خدمات کو تقسیم کرتے تو ان کسے ایسک پسورے گھرانسے کسو ایسسک‬
‫گھر کی خدمت کے لئے دیا کرتے۔ آپ اسے سخت ناپسند فرماتے کہ ایک ہی گ ھر کسے افسراد‬
‫میں علیحدگی کروائی جائے۔‬

‫فص ‪ ،‬ع َن اب َ‬
‫َ َ‬
‫ي ‪ ،‬قَسسا َ‬
‫ي‬
‫ل ‪ :‬ب َعَ س َ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫َ‬
‫ث َ‬
‫ح ْ ٌ‬
‫معِسسي الن ّب ِس ّ‬
‫ن ع َل ِس ّ‬
‫حك َم ِ ‪ ،‬عَس ْ‬
‫ن أِبي لي ْلى ‪ ،‬ع َ ِ‬
‫ِ ْ ِ‬
‫ل ‪ :‬جمع ست أوَ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن َ‬
‫ما أت َي ْت ُ ُ‬
‫ما ‪ ،‬فَل ّ‬
‫ن أِبيعُهُ َ‬
‫م ْ‬
‫ن َ‬
‫صلى الله عليه وسلم ب ِغُل َ‬
‫َ َ ْ َ ْ‬
‫ملوكي ْ ِ‬
‫سبَ ِي ّي ْ ِ‬
‫مي ْ ِ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ت ‪َ ،‬قا َ‬
‫ل ‪ :‬فأد ْرِك أد ْرِك‪) .‬ابن ابي شيبة؛ حديث ‪(23258‬‬
‫ت ‪ :‬فَّرقْ ُ‬
‫ت ؟ قُل ْ ُ‬
‫فَّرقْ َ‬
‫سیدنا علی رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے دو جنگسسی‬
‫قیدی غلموں کو میرے ساتھ بھیجا کہ ان کی خدمات کو فروخسست کسسر دیسسا جسسائے۔ جسسب میسسں‬
‫واپس آیا تو آپ نے پوچھا‪" ،‬انہیں اکٹھا رک ھا ہے یسا السگ السگ؟" میسں نسے عسرض کیسا‪" ،‬السگ‬
‫الگ۔"۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬تمہیں اس بات کا علم ہونا چاہیے تھا )کہ انہیسسں السسگ کرنسسا جسسائز نہیسسں‬
‫ہے۔"‬

‫فيان ‪ ،‬ع َن ع َبد الله بسن ال ْحسسن ‪ ،‬ع َس ُ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫مس َ‬
‫ة اب ْن َسةِ‬
‫ْ ْ ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫س ْ َ ُ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫َ‬
‫حد ّث ََنا ُ‬
‫مسهِ َفاط ِ َ‬
‫نأ ّ‬
‫ْ‬
‫َ َ ِ‬
‫ِ ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫مسسا‬
‫ن أي ْل َ‬
‫حارِث َ َ‬
‫م ي َعِْني ِ‬
‫ج إلى ظهْرٍ فَباع َ ب َعْ َ‬
‫حَتا َ‬
‫ة ‪ ،‬فا ْ‬
‫ن َ‬
‫ن‪،‬أ ّ‬
‫ُ‬
‫ة قد ِ َ‬
‫ح َ‬
‫م ‪ ،‬فل ّ‬
‫ضسسهُ ْ‬
‫م ْ‬
‫ن َزي ْد َ ب ْ َ‬
‫سي ْ ٍ‬
‫ش سأ ْ‬
‫الله عليه وسلم رَأى امرأ ًَ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن هَسذ ِهِ ؟‬
‫ما‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫كي‬
‫ب‬
‫ت‬
‫م‬
‫ه‬
‫ن‬
‫م‬
‫ة‬
‫صلى‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ال‬
‫لى‬
‫ع‬
‫م‬
‫د‬
‫قَ ِ َ َ‬
‫ِ ُْ ْ َْ ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ َ‬
‫َ‬
‫ِّ ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قا َ‬
‫ي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم ‪ :‬ا ُْرد ُد ْه ُ أوِ ا ْ‬
‫ه‪.‬‬
‫ها ‪ ،‬فَ َ‬
‫فَأ ُ ْ‬
‫دا َباع َ وَل َد َ َ‬
‫شست َرِ ِ‬
‫ن َزي ْ ً‬
‫خب َِر أ ّ‬
‫ل لَ ُ‬
‫ه الن ّب ِ ّ‬
‫)ابن ابي شيبة؛ حديث ‪(23257‬‬
‫فاطمہ بنت حسین بیان کرتی ہیں کہ زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ ایلہ سے واپس آئے۔ انہوں نے‬
‫کچھ غلموں کی خدمات کو فروخت کر دیا۔ جب نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم آئے تو آپ نے‬
‫ایک خاتون کو روتے ہوئے دیکھا۔ آپ نے پوچھا‪" ،‬انہیں کیا ہوا؟" آپ کو بتایا گیا کہ زیسسد ن سے ان‬
‫کے بیٹے کی خدمات کو فروخت کیا ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسلم نسے )خسسدمات خریسدنے‬
‫‪94‬‬

‫والوں سے( فرمایا‪" ،‬یا تو ان کے بیٹے کو واپس کرو یا پھر ماں کی خسسدمات کسسو ب ھی خریسسد‬
‫لو۔"‬

‫ة ‪ ،‬عَ َ‬
‫خ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن فَّرو َ‬
‫ن‬
‫ن ع ُل َي ّ َ‬
‫مسسُر ‪ :‬أ ْ‬
‫ل ‪ :‬ك ََتسس َ‬
‫ن أّيو َ‬
‫َ‬
‫ب عُ َ‬
‫ن عَ ْ‬
‫ن ِديَنارٍ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ب ‪ ،‬عَ ْ‬
‫ْ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫م ِ‬
‫رو ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ن‪) .‬ابن ابي شيبة؛ حديث ‪(23259‬‬
‫ي‬
‫و‬
‫خ‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ن‬
‫ي‬
‫ب‬
‫قوا‬
‫ر‬
‫َ‬
‫ف‬
‫ت‬
‫ل‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َْ َ‬
‫ّ‬
‫َْ ِ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے قانون بنایا‪)" ،‬خدمات کی منتقلی ک سے وقسست( دو ب ھائیوں میسسں‬
‫علیحدگی نہ کروائی جائے۔"‬

‫َ‬
‫ل ‪ :‬عَ َ‬
‫ما َقا َ‬
‫ن فَّرو َ‬
‫ن‬
‫ن ع ُي َي ْن َ َ‬
‫ن أِبيسسهِ ‪ :‬أ ّ‬
‫ن ع َب ْد ِ الّر ْ‬
‫َ‬
‫خ ‪ -‬وَُرب ّ َ‬
‫ح َ‬
‫ن عَ ْ‬
‫ْ‬
‫رو ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ة ‪ ،‬عَ ْ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫م ٍ‬
‫ن بْ ِ‬
‫م ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫مَر ‪َ ،‬قا َ‬
‫ها‪) .‬ابن ابي شيبة؛ حديث ‪(23260‬‬
‫ل ‪ :‬ل تُ َ‬
‫م وَوَلد ِ َ‬
‫ن ال ّ‬
‫عُ َ‬
‫فّرُقوا ب َي ْ َ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے قانون بنایا‪)" ،‬خدمات کی منتقلی کے وقسست( مساں اور اس کسی‬
‫اولد میں علیحدگی نہ کروائی جائے۔"‬

‫ق سا ْ ُ َ‬
‫ل ‪ :‬قَسسا َ‬
‫ل ‪ ،‬قَسسا َ‬
‫ن‬
‫ع َ‬
‫ل ِ‬
‫ن ع ُل َي ّ َ‬
‫ح ِ‬
‫ل ‪ -‬أو ْ َ‬
‫ن ُ‬
‫َ‬
‫كي س ُ‬
‫ح َ‬
‫ن ُيون ُ َ‬
‫م ب ْس ُ‬
‫ن ه ِل َ ٍ‬
‫س ‪ ،‬عَ ْ‬
‫ة ‪ ،‬عَ ْ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫مي ْد ِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫م‬
‫س‬
‫ه‬
‫ع‬
‫ف‬
‫ر‬
‫ي‬
‫ت‬
‫س‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ل‬
‫س‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ئة‬
‫م‬
‫ي‬
‫ر‬
‫ت‬
‫س‬
‫ش‬
‫ي‬
‫ن‬
‫أ‬
‫‪:‬‬
‫ال‬
‫س‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ع‬
‫لى‬
‫إ‬
‫ن‬
‫فا‬
‫ّ‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ما‬
‫ث‬
‫ع‬
‫ب‬
‫ت‬
‫ك‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‬‫ال‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ع‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫َ ِ َ ِ‬
‫ْ َ‬
‫َ‬
‫َ َ‬
‫ْ ِ َْ ٍ َْ ُ ُ ْ‬
‫َ ُ ْ ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ه‪) .‬ابسن ابسي شسيبة؛ حسديث‬
‫يس‬
‫ب‬
‫و‬
‫ه‬
‫نس‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ق‬
‫ر‬
‫فس‬
‫َ‬
‫ت‬
‫ئا‬
‫ي‬
‫ش‬
‫لي‬
‫ري‬
‫ت‬
‫ش‬
‫ت‬
‫ل‬
‫و‬
‫‪،‬‬
‫ة‬
‫ن‬
‫دي‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫لى‬
‫إ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫ن َواِلسد ِ ِ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫‪(23261‬‬
‫سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ نے عقال کو لکھا‪" ،‬ایک ہی خاندان کے سو افراد کی خدمات کسسو‬
‫خرید کر انہیں مدینہ روانہ کر دو۔ خدمات کی خریداری اس طرح سسے مسست کرنسسا جسسس کسے‬
‫نتیجے میں اولد اور والدین میں علیحدگی ہو جائے۔"‬

‫ان احادیث کو درج ذیل حدیث کے ساتھ مل کر پڑھا جائے تسسو صسسورت اور واضسسح ہو‬
‫جاتی ہے۔‬
‫حدثنا أبو كريب حدثنا وكيع عن زكريا بن إسحاق عن يحيى بن عبسسد اللسسه بسسن صسسيفي‬
‫عن أبي معبد عن بن عباس أن رسول الله صلى الله عليه وسلم بعث معاذ بن جبسسل‬
‫إلى اليمن فقال اتق دعوة المظلوم فإنها ليس بينها وبين الله حجاب۔ قال أبو عيسى‬
‫وفي الباب عن أنس وأبي هريرة وعبد الله بن عمر وأبي سعيد وهسسذا حسسديث حسسسن‬
‫صحيح وأبو معبد اسمه نافذ ۔ )ترمذی‪ ،‬کتاب الدب‪ ،‬حديث ‪(2014‬‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے‬
‫جب سیدنا معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ کو یمن کا عامل بنا کر بھیجا تو فرمایا‪" ،‬مظلوم کی‬
‫بددعا سے بچنا۔ اس کے اور اللہ کے درمیان کوئی رکاوٹ نہیں ہوتی۔" ترمذی نے اس حدیث‬
‫کو انس‪ ،‬ابوھریرہ‪ ،‬عبداللہ بن عمر اور ابوسعید رضی اللہ عنہم سے بھی روایسست کیسسا ہے اور‬
‫کہا ہے کہ یہ حدیث حسن صحیح ہے۔‬

‫اس معاملے میں مسلمانوں کے اہل علم میں کوئی اختلف نہیں ہے کسہ کسسسی ب ھی‬
‫حالت میں غلموں کے خاندان کو تقسیم نہیں کیا جائے گا۔ خطابی لکھتے ہیں‪:‬‬
‫و ل یختلف مذاہب العلماء فی کراھۃ التفریق بین الجاریۃ و ولدھا الصغیر سواء کانت مسسسبیۃ‬
‫من بلد الکفر او کان الولد من زنا او کان زوجہا اھلہا فی السلم فجاءت بولد۔ و ل اعلمھم‬
‫یختلفون فی ان التفرقۃ بینہما فی العتق جائز و ذلک ان العتق ل یمنع من الحضانۃ کما یمنسسع‬
‫منہا البیع۔ )خطابی‪ ،‬معالم السنن‪ ،‬کتاب الجہاد(‬
‫ایک لونڈی اور اس کے چھوٹے بچے کو علیحدہ کرنے کے بارے میں علماء کے نقط سہ ہائے نظسسر‬
‫میں کوئی اختلف نہیں ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ وہ دشمن کے کسسسی ملسسک س سے‬
‫آئی ہو یا اس کا بچہ بدکاری کا نتیجہ ہو یا اس کسے مسسالکوں نسے اس کسسی شسسادی مسسسلمانوں‬
‫میں کر دی ہو )ہر صورت میں اس کا بچہ اس کے پاس ہی رہے گا۔( اس معاملے میسسں ب ھی‬
‫مجھے کوئی اختلف نہیں مل سکا کہ )ماں یا بچے میں سے کسی ایک کو( آزاد کر دینے کسسی‬
‫صورت میں علیحدگی جائز ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ آزاد کر دینے کی صورت میسسں تسسو مسساں‬
‫اپنے بچے کی پرورش کر سکتی ہے مگر خدمات کی منتقلی کی صورت میں نہیں۔‬

‫‪95‬‬

‫غلموں ک ے قانونی حقوق‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے قانونی نظام میں یہ اصلح فرمائی کہ قسسانون‬
‫کی نظر میں غلموں کو برابر قرار دے دیا گیا۔ غلم کسی جسسان‪ ،‬مسسال اور عسزت کسسو‬
‫بھی اسی طرح محترم قرار دیا گیا جیسا کہ آزاد شخص کسسی جسسان‪ ،‬مسسال اور عسسزت‬
‫محترم ہے۔ آقاؤں کی زیادتیوں کے خلف غلموں کو عدالت میں جانے کسسا حسسق مسسل‬
‫گیا۔ غلموں کی گواہی کو عدالت میں قبول کیا جانے لگا۔ جنسسگ میسسں شسسریک ہونے‬
‫والے غلموں کو مال غنیمت میں سے بھی حصہ دیا جسسانے لگسسا اور غلمسسوں کسسو اپنسے‬
‫آقاؤں کا وارث بنایا جانے لگا۔‬

‫غلم کی جان کی حفاظت‬
‫قصاص کا قانون تورات ہی میں بیان کر دیا گیا تھا۔ قرآن مجید نے اسی قانون کسسی‬
‫توثیق کرتے ہوئے حکم دیا کہ قاتل و مقتول خواہ کوئی بھی ہوں‪ ،‬مقتول کے قصسساص‬
‫میں قاتل کو موت کی سزا دی جائے گی۔ ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫حر وال ْعَب ْد ُ بال ْعَْبسسد ِ وا ُ‬
‫لنَثسسى‬
‫ص ِفي ال ْ َ‬
‫م ال ْ ِ‬
‫َيا أي َّها ال ّ ِ‬
‫قت َْلى ال ْ ُ‬
‫مُنوا ك ُت ِ َ‬
‫ِ‬
‫ب ع َل َي ْك ُ ْ‬
‫نآ َ‬
‫صا ُ‬
‫ق َ‬
‫َ‬
‫حّر ِبال ْ ُ ّ َ‬
‫ذي َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ن ذ َل ِس َ‬
‫خيسهِ َ‬
‫ك‬
‫نأ ِ‬
‫ه ِ‬
‫ن عُ ِ‬
‫ف وَأَداٌء إ ِل َي ْسهِ ب ِإ ِ ْ‬
‫معُْرو ِ‬
‫ح َ‬
‫يٌء َفات ّب َسساع ٌ ب ِسسال ْ َ‬
‫ي ل َس ُ‬
‫ِبالنَثى فَ َ‬
‫سسسا ٍ‬
‫شس ْ‬
‫مس ْ‬
‫فس َ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه عَ َ‬
‫ص‬
‫تَ ْ‬
‫م ٌ‬
‫في ٌ‬
‫م فِسسي ال ِ‬
‫ف ِ‬
‫خ ِ‬
‫ذا ٌ‬
‫ن اع ْت َ َ‬
‫م وََر ْ‬
‫م۔ وَلك س ْ‬
‫ب أِلي س ٌ‬
‫دى ب َعْد َ ذ َل ِك فل ُ‬
‫ةف َ‬
‫ح َ‬
‫ن َرب ّك ْ‬
‫ق َ‬
‫م ْ‬
‫م ْ‬
‫صسسا ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ن ۔ )البقرة ‪(179-2:178‬‬
‫قو‬
‫ُ‬
‫ت‬
‫ت‬
‫م‬
‫ك‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ب‬
‫با‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ا‬
‫لي‬
‫و‬
‫أ‬
‫يا‬
‫ة‬
‫يا‬
‫ح َ ٌ َ ِْ‬
‫َ ِ َ ْ َّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫اے ایمان والو! تمہارے لئے قصاص کا قانون بنا دیا گیا ہے۔ آزاد نے قتل کیسسا ہو تسسو و ہی آزاد‪،‬‬
‫غلم نے قتل کیا ہو تو وہی غلم‪ ،‬اور عورت نے قتل کیا ہو تو وہی عورت قتل کی جائے گی۔‬
‫جس قاتل کو اس کا )دینی( بھائی معاف کر دے تو اس پر لزم ہے کہ وہ قانون کسسے مطسسابق‬
‫دیت کا تصفیہ کیا جائے اور قاتل اسے اچھے طریقے سے ادا کرے۔ یہ تم ہارے رب کسسی طسسرف‬
‫سے ایک تخفیف اور رحمت ہے۔ اس پر بھی جو زیادتی کرے تسسو اس ک سے لئے دردنسساک سسسزا‬
‫ہے۔ اے عقل مندو!‪ ،‬تمہارے لئے قصاص میں زندگی ہے۔ امید ہے کہ تسسم اس کسسی خلف ورزی‬
‫سے پرھیز کرو گے۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے بھی اس کی وضاحت فرما دی کہ اگر کوئی‬
‫آزاد کسی غلم کو قتل کرے خواہ وہ اس کا مالک ہی کیسسوں ن سہ ہو‪ ،‬اس سے ب ھی اس‬
‫جرم کی پاداش میں قتل ہی کیا جائے گا۔‬
‫أخبرنا محمود بن غيلن وهو المروزي ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا أبو داود الطيالسي ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا‬
‫هشام عن قتادة عن الحسن عن سمرة أن رسول الله صلى اللسسه عليسسه وسسسلم قسسال‬
‫من قتل عبده قتلناه ومن جدعه جدعناه ومن أخصاه أخصيناه ‪.‬‬
‫أخبرنا نصر بن علي ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا خالد ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا سعيد ‪ ،‬عن قتادة عسسن الحسسسن‬
‫عن سمرة۔ اخبرنا قتيبة بن سعيد ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا أبو عوانة عن قتادة عن الحسسسن عسسن‬
‫ن‬
‫ن قَت َسساد َ َ‬
‫ن أ َب ِسسي ع َُروب َس َ‬
‫مد‪ .‬ثنا وَ ِ‬
‫م َ‬
‫سمرة‪ ،‬ح ّ‬
‫ن َ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫ة‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ة‪ ،‬ع َس ْ‬
‫كيعٌ ع َس ْ‬
‫ي بْ ُ‬
‫دثنا ع َل ِ ّ‬
‫سسِعيد ِ ب ْس ِ‬
‫ب ۔ قال أبو عيسسسى هسسذا حسسديث حسسسن غريسسب )ترمسسذی‪،‬‬
‫ن ُ‬
‫ن َ‬
‫الح َ‬
‫س ُ‬
‫جن ْد َ ٍ‬
‫ن‪ ،‬ع َ ْ‬
‫مَرة َ ب ْ ِ‬
‫س ِ‬
‫کتاب الديات‪ ،‬حديث ‪ ،1414‬ابن ماجة‪ ،‬کتسساب الديسسة‪ ،‬حسسديث ‪ ،2663‬نسسسائی‪ ،‬کتسساب‬
‫القسامة‪ ،‬حديث ‪(4736‬‬
‫سیدنا سمرہ بن جندب رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم‬
‫نے فرمایا‪" ،‬جو اپنے غلم کو قتل کرے گا‪ ،‬ہم بھی اسے ہی قتل کریں گے۔ جو اس کسسا کسسوئی‬
‫عضو کاٹے گا تو ہم بھی اس کا وہی عضو کاٹیں گے‪ ،‬اور جو اسے خصسسی کسسرے گسسا‪ ،‬ہم ب ھی‬
‫اسے خصی کریں گے۔‬

‫َ‬
‫ن‬
‫وَأ َ ْ‬
‫خب ََرِنى أُبو ع َب ْد ِ الّر ْ‬
‫ح َ‬
‫م ِ‬
‫َ‬
‫حد ّث ََنا‬
‫ب َ‬
‫ن أّيو َ‬
‫َ‬
‫حد ّث ََنا زَِياد ُ ب ْ ُ‬
‫ّ‬
‫ما ‪:‬‬
‫س َر ِ‬
‫ه ع َن ْهُ َ‬
‫ى الل ُ‬
‫ض َ‬
‫ع َّبا ٍ‬

‫حسافِ ُ‬
‫ى أَ ْ‬
‫جن َي ْسدِ‬
‫سل َ ِ‬
‫ن ال ْ ُ‬
‫ظ َ‬
‫مسَر ال ْ َ‬
‫ال ّ‬
‫ن عُ َ‬
‫حسد ّث ََنا اْبس ُ‬
‫ى ب ْس ُ‬
‫خب ََرَنا ع َل ِس ّ‬
‫م ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ل َقا َ‬
‫حكم ِ َقا َ‬
‫ن‬
‫ال ْ َ‬
‫حد ّث ََنا لي ْ ٌ‬
‫قا ِ‬
‫ن ال َ‬
‫ك َ‬
‫مال ِ ٍ‬
‫ن َ‬
‫س ُ‬
‫ى َواب ْس ُ‬
‫م بْ ُ‬
‫ل ع َل ِ ّ‬
‫ث عَ ِ‬
‫إ َِذا قَت َ َ‬
‫دا فَهُوَ قَوٌَد‪) .‬بيهقى؛ سنن الكسسبرى؛‬
‫م ً‬
‫ل ال ْ ُ‬
‫مت َعَ ّ‬
‫حّر ال ْعَب ْد َ ُ‬
‫‪96‬‬

‫حديث ‪(15941‬‬
‫سیدنا علی اور ابن عباس رضی اللہ عنہم نے فرمایا‪" ،‬اگر آزاد ن سے غلم کسسو جسسان بسسوجھ کسسر‬
‫قتل کیا ہو تو اسے قتل کیا جائے گا۔‬

‫عن سهيل ب َ‬
‫ب ‪ ،‬قَسسا َ‬
‫ل‪:‬‬
‫مي ْد ٍ ‪َ ،‬‬
‫ن ُ‬
‫َ‬
‫م َ‬
‫ن َ‬
‫ن ال ْ ُ‬
‫ح َ‬
‫س سي ّ ِ‬
‫ن أِبي َ‬
‫صسسال ٍِح ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫حد ّ َث ََنا ع َِبيد َة ُ ب ْ ُ‬
‫س سِعيد ِ ب ْس ِ‬
‫ُ َْ ِ ْ ِ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قت َل ب ِسهِ ‪،‬‬
‫قال ‪ :‬ي ُ ْ‬
‫ت إ ِلي ْهِ ‪ ،‬ف َ‬
‫ملوكا ؟ قال ‪ :‬ي ُ ْ‬
‫م َر َ‬
‫ل ُ‬
‫ن َر ُ‬
‫َ‬
‫جع ْ ُ‬
‫قت َل ب ِهِ ‪ ،‬ث ّ‬
‫م ْ‬
‫حّر قت َل َ‬
‫سألت ُ ُ‬
‫ج ٍ‬
‫ه عَ ْ‬
‫ل ‪ :‬والل ّه ل َو اجتمع ع َل َيه أ َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ه‪) .‬ابن ابی شيبة؛ حديث ‪(28091‬‬
‫ب‬
‫م‬
‫لته‬
‫ت‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ل‬
‫ن‬
‫م‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ل‬
‫ه‬
‫قا‬
‫م‬
‫ْ‬
‫ْ ِ ِ‬
‫َ‬
‫ْ ِ‬
‫َ ِ ِ ْ َ َ َ‬
‫ثُ ّ‬
‫َ َ ِ‬
‫)جلیل القدر تابعی عالم( سعید بن مسیب علیہ الرحمۃ سے ایسے آزاد شخص کے بارے میسسں‬
‫پوچھا گیا جس نے غلم کو قتل کر دیا تھا۔ انہوں نے فرمایا‪" ،‬وہ بھی )قصاص میں( قتل کیسسا‬
‫جائے گا۔" لوگ دوبارہ ان کے پاس آئے تو انہوں نے فرمایسا‪" ،‬وہ قتسسل کیسسا جسائے گسسا۔ خسسدا کسسی‬
‫قسم! اگر تمام اھل یمن نے مل کر بھی کسی غلم کو قتل کیا ہو تو وہ سب اس کسے بسسدلے‬
‫قتل کئے جائیں گے۔"‬

‫غلم کو خصی کرنا اس کا مثلہ کرنسسا ہے۔ سسیدنا عمسر رضسی اللسہ عنسہ نسے اپنسے دور‬
‫حکومت میں غلم تو کیا جانوروں کو خصی کرنے پر بھی پابندی عائد کر دی تھی۔‬

‫مالک پر عدالت میں مقدم ہ کرن ے کا حق‬
‫آقاؤں کے ظلم و زیادتی ک سے خلف غلمسسوں ک سے عسسدالت میسسں جسسانے ک سے ب ہت سسے‬
‫واقعات حدیث کی کتب میں موجود ہیں۔ ان میں سے بعض واقعسسات ہم اس کتسساب‬
‫میں بیان کر چکے ہیں۔ سیدنا ابوذر غفاری رضی اللہ عنسہ کسے غلم نسے بسسرا بھل ک ہے‬
‫جانے پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے شکایت کی۔ سیدنا عمر رضی اللسسہ‬
‫عنہ کے پاس سیرین اس وجہ سے آئے کہ ان کے آقا نے انہیں مکسساتبت ک سے ذریع سے آزاد‬
‫کر دینے سے انکار کر دیا تھا۔ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ خود یہ جائزہ لیتے رہتے تھے کہ‬
‫کہیں کوئی اپنے غلم پر ظلم تو نہیں کر رہا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم تسسو‬
‫غلموں کے لئے ہر وقت اپنے دروازے کھلے رکھتے تھے تاکہ ان کسسی شسسکایات کسسا ازال سہ‬
‫کیا جا سکے۔‬
‫ة‪َ :‬قا َ‬
‫دثنا ُ‬
‫ن‬
‫شعْب َ َ‬
‫ن قَت َي ْب َ َ‬
‫ل‪ :‬ح ّ‬
‫ي‪ .‬ح ّ‬
‫ح ّ‬
‫مد ِ وَ َ‬
‫سل ْ ُ‬
‫ص َ‬
‫دثنا ع َب ْد ُ ال ّ‬
‫دثنا ن َ ْ‬
‫ن ع َل ِ ّ‬
‫ة عَ ْ‬
‫م بْ ُ‬
‫ن ع َل ِ ّ‬
‫صُر ب ْ ُ‬
‫ي اب ْ ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه‬
‫س‬
‫الل‬
‫ل‬
‫سو‬
‫س‬
‫س‬
‫ر‬
‫د‬
‫س‬
‫ي‬
‫ب‬
‫د‬
‫س‬
‫أخ‬
‫ت‬
‫ل‬
‫ة‬
‫ن‬
‫ي‬
‫د‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ل‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ة‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ت‬
‫ن‬
‫كا‬
‫ن‬
‫إ‬
‫ل‪:‬‬
‫قا‬
‫ك؛‬
‫ل‬
‫م‬
‫ن‬
‫ب‬
‫س‬
‫ن‬
‫أ‬
‫ن‬
‫ع‬
‫د‪،‬‬
‫ِ‬
‫َ َِِ ِ َ‬
‫َ ِ‬
‫ِ ْ‬
‫َزي ْ ٍ َ ْ َ ِ ْ ِ َ ِ ٍ‬
‫ُ َِ ِ َ ُ‬
‫ِ‬
‫َ ُ ِ ْ ْ ِ‬
‫ث َ‬
‫ة‪،‬‬
‫حي ْ ُ‬
‫ن ي َد ِ َ‬
‫مد َِين ِ‬
‫ت ِ‬
‫ما ي َن ْزِع ُ ي َد َه ُ ِ‬
‫ب ب ِهِ َ‬
‫حّتى ت َذ ْهَ َ‬
‫ها َ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫شاَء ْ‬
‫صلى الله عليه وسلم فَ َ‬
‫م َ‬
‫م ْ‬
‫جت َِها‪) .‬ابن ماجة‪ ،‬کتاب الزهد‪ ،‬حديث ‪(4177‬‬
‫حا َ‬
‫ِفي َ‬
‫سیدنا انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ اھل مدینہ کی ایک کنیز تھی۔ وہ آ کر رسسسول الل سہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کا بازو پکڑ لیسستی۔ آپ اس سسے بسسازو نسہ چھڑاتسے ت ھے بلکسہ وہ اپنسے‬
‫مسئلے کے حل کے لئے مدینہ میں آپ کو جہاں چاہتی لے جایا کرتی تھی۔‬

‫حدثنا ع َمرو بن رافع‪ .‬حدثنا جرير ع َن مسل ِم ال َع ْور‪ ،‬ع َ َ‬
‫ك؛ قَسسا َ‬
‫ن‬
‫ل‪ :‬ك َسسا َ‬
‫مال ِس ٍ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫ن َ‬
‫ْ‬
‫َ ِ ٌ‬
‫َ ِ‬
‫س ب ْس ِ‬
‫ن أن َ ِ‬
‫ْ ُ ْ ٍ‬
‫ْ ُ ْ ُ َ ِ ٍ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ع‬
‫ي‬
‫س‬
‫ش‬
‫ي‬
‫و‬
‫ض‪،‬‬
‫س‬
‫ري‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫د‬
‫سو‬
‫س‬
‫ع‬
‫ي‬
‫سلم‬
‫س‬
‫وس‬
‫سه‬
‫س‬
‫علي‬
‫سه‬
‫س‬
‫الل‬
‫صلى‬
‫ه‬
‫الل‬
‫ل‬
‫سو‬
‫ب د َع ْسوَةَ‬
‫جن َسساَز َ‬
‫ِ‬
‫جيس ُ‬
‫ة‪ ،‬وَي ُِ‬
‫ُ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َر ُ‬
‫ِ‬
‫َ َ‬
‫َ ِ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ماَر‪) .‬ابن ماجة‪ ،‬کتاب الزهد‪ ،‬حديث ‪(4178‬‬
‫ب ال ِ‬
‫ك‪ ،‬وَي َْرك ُ‬
‫ملو ِ‬
‫ح َ‬
‫م ْ‬
‫ال ْ َ‬
‫سیدنا انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم مریضوں کی‬
‫عیادت کیا کرتے‪ ،‬جنازے میں شرکت کیا کرتسے‪ ،‬غلمسسوں کسسی فریسساد پسسر اقسسدامات کرتسے اور‬
‫)عجز و انکسار کا یہ عالم تھا کہ حکمران ہونے کے بسساوجود( گسسدھے پسسر سسسواری ب ھی کسسر لیسسا‬
‫کرتے تھے۔‬

‫مسلمانوں کے دور انحطاط میں اگرچہ غلموں سے متعلسسق ب ہت سسے مسسسائل ب ھی‬
‫پیدا ہوئے لیکن ان کے قانونی حقوق ہمیشہ انہیں ادا کئے جسساتے ر ہے۔ ٹسسی ڈبلیسسو آرنلسڈ‬
‫لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪The slaves, like other citizens, had their rights, and it is even said that a slave might‬‬
‫‪summon his master before the Qadi for ill usage, and that if he alleged that their tempers‬‬
‫‪97‬‬

‫‪were so opposite, that it was impossible for them to agree, the Qadi could oblige his‬‬
‫)‪master to sell him. (T. W. Arnold; Preaching of Islam‬‬
‫دوسرے شہریوں کی طرح غلموں کے حقوق بھی تھے۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ برے سسسلوک پسسر‬
‫ایک غلم اپنے آقا کے خلف مقدمہ بھی قاضی کے پاس لے کر جا سکتا ہے۔ اگسسر وہ یسہ السسزام‬
‫لگا دے کہ )اس کے اور اس کے آقا کے( مزاج میں بہت فرق ہے اور ان کا اتفاق ناممکن ہے‬
‫تو قاضی آقا کو حکم جاری کر سکتا ہے کہ وہ اس غلم کی خدمات کسسسی اور فروخسست کسسر‬
‫دے۔‬

‫غلموں اور لون ڈیوں کی عزت کی حفاظت‬
‫غلموں اور لونڈیوں کی عزت کو اتنا محفوظ بنا دیا گیا تھا کہ ایک لون سڈی کسسی آبسسرو‬
‫ریزی کرنے کے جرم میں رسول اللہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے مسساعز اسسسلمی‬
‫)جنہوں نے توبہ کر کے دنیا کی سزا قبول کی تھی( کو عبرت ناک طریقے سے رجسسم‬
‫کی سزا دی تھی۔‬
‫حدثنا قتيبة بن سعيد وأبو كامل الجحدري )واللفظ لقتيبة(‪ .‬قال‪ :‬حدثنا أبو عوانة عسسن‬
‫سماك‪ ،‬عن سعيد بن جبير‪ ،‬عن ابن عباس؛ أن النسسبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم قسسال‬
‫لماعز بن مالك )أحق ما بلغني عنك؟( قال‪ :‬وما بلغك عني؟ قال )أنك وقعت بجاريسسة‬
‫آل فلن( قال‪ :‬نعم‪ .‬قال‪ :‬فشهد أربسسع شسسهادات‪ .‬ثسسم أمسر بسسه فرجسسم‪) .‬مسسسلم‪ ،‬كتساب‬
‫الحدود‪ ،‬حديث ‪ ،4427‬نسائی سنن الکبری‪ ،‬کتاب الرجم‪ ،‬حديث ‪(7134‬‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ماعز بن‬
‫مالک سے پوچھا‪" ،‬کیا جو خبر مجھ تک پہنچی ہے وہ سچ ہے؟" انہوں نے کہا‪" ،‬آپ تک کیا بسسات‬
‫پہنچی ہے؟" آپ نے فرمایا‪" ،‬تم نے فلں کی لونڈی کی آبرو ریزی کسسی ہے؟" ان ہوں ن سے چسسار‬
‫مرتبہ قسم کھا کر اقرار کر لیا۔ آپ نے انہیں رجم کرنے کا حکم دیا۔‬

‫اس کے علوہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے اس شسسخص ک سے لئے سسسخت‬
‫وعید بیان فرمائی جو اپنے غلم یا لونڈی پر جھوٹا الزام عائد کرے۔‬
‫حدثنا مسدد‪ :‬حدثنا يحيى بن سعيد‪ ،‬عن فضيل بن غزوان‪ ،‬عن ابن أبي نعم‪ ،‬عن أبي‬
‫هريرة رضي الله عنه قال‪ :‬سمعت أبا القاسم صلى اللسسه عليسسه وسسسلم يقسسول‪) :‬مسسن‬
‫قذف مملوكه‪ ،‬وهو بريء مما قال‪ ،‬جلد يوم القيامة‪ ،‬إل أن يكون كما قال(‪) .‬بخاری‪،‬‬
‫كتاب الحدود‪ ،‬حديث ‪(6858‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ انہوں نے ابوالقاسم صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫کو فرماتے سنا ہے‪" ،‬جس نے اپنے غلم پر الزام لگایا اور وہ اس الزام سے بری ہے‪ ،‬تو اسسسے‬
‫قیامت کے دن کوڑے لگائے جائیں گے۔ سوائے اس کے کہ اس نے سچ کہا ہو" )یسا پ ھر وہ دنیسسا‬
‫میں اپنے جرم کی سزا بھگت لے۔(‬

‫صحابہ و تابعین کے زمانے میں اگر کوئی لونڈی مکاتبت کر لیتی تو اس کے بعسسد اس‬
‫کے ساتھ ازدواجی تعلق قائم کرنے کو قابل تعزیر جرم قرار دیا جاتا۔‬
‫ه َقسا َ‬
‫ن‬
‫جسسل وَط ِس َ‬
‫ن ك َسسا َ‬
‫ل إِ ْ‬
‫ن قََتاد َة َ ِفي َر ُ‬
‫َ‬
‫ن الد ّ ْ‬
‫مك َسسات َب َت َ ُ‬
‫ئ ُ‬
‫ن َ‬
‫ي ‪ ,‬عَ ْ‬
‫وائ ِ ّ‬
‫ست َ َ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫مهْد ِيّ ‪ ,‬ع َ ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قسُر‪.‬‬
‫س ع َلي ْسهِ العُ ْ‬
‫ست َكَرهََها فعَلي ْهِ العُ ْ‬
‫ه فعَلي ْسهِ ال َ‬
‫حد ّ ‪ ,‬وَإ ِ ْ‬
‫قُر َوال َ‬
‫ا ْ‬
‫ت طسساوَع َت ْ ُ‬
‫ن كسسان َ ْ‬
‫حسد ّ وَلي ْس َ‬
‫)مصنف ابن ابی شيبة‪ ،‬كتاب الحدود‪ ،‬حديث ‪(28619‬‬
‫قتادہ ایسے شخص کے بارے میں بیان کرتے ہیں جس نسے اپنسسی مکسساتبہ لون سڈی سسے ازدواجسسی‬
‫تعلق قائم کیا تھا‪ ،‬وہ کہتے ہیں‪" ،‬اگر اس نے ایسا جبرا ً کیا ہے تو اسے )بدکاری کسسی( شسسرعی‬
‫حد کے علوہ سزا بھی دی جائے گی۔ اگر اس نے ایسا اس کی رضامندی سے کیا ہے تسسو پ ھر‬
‫اسے صرف شرعی حد لگائی جائے گی اور اضافی سزا نہ دی جائے گی۔‬

‫غلم ک ے لئ ے گوا ہی دین ے کا حق‬
‫غلموں کی گواہی کو بھی عدالت میں قبول کیا جاتا تھا۔‬
‫‪98‬‬

‫حدثنا علي بن عبد الله‪ :‬حدثنا إسماعيل بن إبراهيم‪ :‬أخبرنا أيوب‪ ،‬عسسن عبسسد اللسسه بسسن‬
‫أبي مليكة قال‪ :‬حدثني عبيد بن أبي مريم‪ ،‬عن عقبة ابن الحارث قسسال‪ :‬وقسسد سسسمعته‬
‫من عقبة لكني لحديث عبيد أحفظ‪ ،‬قال‪ :‬تزوجت امرأة فجاءتنا امراة سوداء‪ ،‬فقال‪:‬‬
‫أرضعتكما‪ ،‬فأتيت النسسبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم فقلسست‪ :‬تزوجسست فلنسسة بنسست فلن‪،‬‬
‫فجاءتنا امراة سوداء فقالت لي‪ :‬إني قد أرضعتكما‪ ،‬وهي كاذبة فأعرض عني‪ ،‬فسسأتيته‬
‫من قبل وجهه‪ ،‬قلت‪ :‬إنها كاذبة‪ ،‬قال‪) :‬كيف بها وقد زعمت أنها قد أرضسعتكما‪ ،‬دعهسا‬
‫عنك(‪ .‬وأشار إسماعيل بإصبعيه السسسبابة والوسسسطى‪ ،‬يحكسسي أيسسوب‪) .‬بخسساری‪ ،‬کتسساب‬
‫النکاح‪ ،‬حديث ‪ 5104‬نسائی سنن الکبری‪ ،‬کتاب القضاء‪ ،‬حديث ‪(5983‬‬
‫سیدنا عقبہ بن حارث رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے ایک خاتون سے شسسادی کسسر لسسی‬
‫تھی۔ ایک سیاہ رنگ کی خاتون )جو کہ نسائی کی روایت کے مطابق لون سڈی تھیسسں( آئیسسں اور‬
‫کہنے لگیں‪" ،‬میں نے تو ان دونوں کو دودھ پلیا ہے۔" میں یہ معاملہ رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ‬
‫و ٰالہ وسلم کے پاس لیا گیا تو میں نے عرض کیا‪" ،‬میں نے فلں بنت فلں سے شادی کی‪ ،‬ی سہ‬
‫سیاہ رنگ کی خاتون آ کر کہہ رہی ہیں کہ میں نے تم دونوں کو دودھ پلیا ہے۔ ی سہ ج ھوٹ بسسول‬
‫رہی ہیں۔"‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم )کو یہ بات اتنی ناگوار گزری کہ آپ( نے رخ پھیسر لیسا۔ میسں نسے‬
‫پھر عرض کیا‪" ،‬یہ جھوٹ بول رہی ہیں۔" آپ نے انگلسی سسے اشسارہ کسر کسے فرمایسا‪" ،‬تسم یسہ‬
‫کیسے کہہ سکتے ہو جبکہ انہوں نے کہا ہے کہ انہوں نے تم دونوں کو دودھ پلیسسا ہے۔ اپنسسی بیسسوی‬
‫سے علیحدہ ہو جاؤ۔"‬

‫ماعز اسلمی کے مقدمے میں بھی رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے اس‬
‫لونڈی کی گواہی کو قبول فرمایا تھا جن کی آبرو ریزی کسسی گئی ت ھی۔ مسسسلمانوں‬
‫کا عمل بھی اس کے بعد یہی رہا ہے کہ ان کے قاضی غلموں کی گواہی کو قبول کیا‬
‫کرتے تھے۔‬
‫وقال أنس‪ :‬شهادة العبد جائزة إذا كان عدل‪ .‬وأجازه شريح وزرارة بسن أوفسى‪ .‬وقسال‬
‫ابن سيرين‪ :‬شهادته جائزة إل العبد لسسسيده‪ .‬وأجسسازه الحسسسن وإبراهيسسم فسسي الشسسيء‬
‫التافه‪ .‬وقال شريح‪ :‬كلكم بنو عبيد وإماء‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب الشهادة(‬
‫سیدنا انس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں‪" ،‬غلم کی گواہی درست ہے اگر وہ اچھے کردار کسا مالسک‬
‫ہو۔" قاضی شریح اور زرارہ بن اوفی بھی اسے درست قرار دیتے ہیں۔ ابن سیرین کسسی رائے‬
‫یہ ہے کہ‪" ،‬غلم کی گواہی درست ہے سوائے ان معاملت کے جسسن میسسں وہ اپنسے آقسسا کسے حسسق‬
‫میں گواہی دے۔" حسن بصری اور ابراہیم نخعی نے معمولی معاملت میں ان کی گواہی کو‬
‫درست قرار دیا ہے۔ شریح تو یہاں تک کہا کرتے تھے‪" ،‬تم سب غلموں اور لونڈیوں کی اولد‬
‫ہی تو ہو۔"‬

‫آقا کے حق میں غلم کی گواہی کو قبول نہ کرنے کی وجہ یہ تھی کہ ممکن ہے وہ آقسسا‬
‫کے دباؤ میں آ کر گواہی دے رہا ہے۔ مشہور واقعہ ہے کہ قاضی شریح جو سیدنا علسسی‬
‫رضی اللہ عنہ کے دور خلفت میں انہی کے مقرر کردہ جج تھے‪ ،‬انہوں نے ایسسک ی ہودی‬
‫کے مقدمے میں سیدنا علی رضی اللہ عنہ کے حق میں ان کسے غلم قنسسبر رضسسی اللسہ‬
‫عنہ کی گواہی کو قبول نہیں کیا تھا اور فیصلہ یہودی کے حق میں دے دیا تھا۔‬

‫غلم ک ے لئ ے دولت کمان ے اور رک ھن ے کا حق‬
‫غلموں کو مال کمانے‪ ،‬رکھنے اور اس سے اپنی ضروریات پوری کرنے کا حسسق ب ھی‬
‫دے دیا گیا تھا۔ حدیث میں ایسے بہت سے واقعات ملتے ہیسسں جسسن میسسں غلمسسوں ک سے‬
‫پاس مال کے موجود ہونے کا تذکرہ ملتا ہے۔ محمد بن سیرین نے جب مکسساتبت کرنسے‬
‫کے لئے اپنا مقدمہ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کی عدالت میسسں پیسسش کیسسا تسسو وہ کسسافی‬
‫مالدار تھے۔ غلم کی آزادی کے وقت بھی اس کے مال کو اسی کی ملکیت قرار دیا‬
‫جاتا تھا سوائے اس کے کہ مالک کچھ مال کو بطور مکاتبت کی قیمت کے وصول کر‬
‫لے۔‬
‫‪99‬‬

‫ن‬
‫ب‪ .‬أ َ ْ‬
‫خب ََرن ِسسي ابسسن ل َِهيعَس َ‬
‫مل َ ُ‬
‫م َ‬
‫ن يَ ْ‬
‫حدثنا َ‬
‫ح ّ‬
‫ة‪ .‬ح وَ حسد ّث ََنا ُ‬
‫حْر َ‬
‫ن وَهْ ٍ‬
‫مسسد ب ْس ُ‬
‫حَيى‪.‬عبد اللهِ ب ْ َ ُ‬
‫ة بْ ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫ّ‬
‫ن أب ِسسي‬
‫م‪ .‬أن ْب َأَنا اللي ْ ُ‬
‫ج ِ‬
‫سع ْ ٍ‬
‫د‪َ ،‬‬
‫ن َ‬
‫بحيى‪ .‬ثنا َ‬
‫مْري َ َ‬
‫ن أِبي َ‬
‫ميع سا‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ث بْ ُ‬
‫سِعيد ُ ب ْ ُ‬
‫ن ع ُب َي ْسد ِ اللسهِ ب ْس ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫سول اللهِ صسسلى اللسسه‬
‫جع ْ ِ‬
‫ن الش ّ‬
‫َ‬
‫مَر؛ قال‪ :‬قال َر ُ‬
‫ن عُ َ‬
‫ج‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ر‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ف ٍ‬
‫ن اب ٍ ِ‬
‫ن َنافٍِع‪ ،‬ع َ ِ‬
‫ن ب ُكي ْرِ ب ْ ِ‬
‫ل العبد ل َه‪ .‬إل ّ أ َ‬
‫ن أَ‬
‫مسسال َُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ٌ‬
‫ْ‬
‫ه‪،‬‬
‫د‬
‫ي‬
‫سسس‬
‫ال‬
‫ط‬
‫ر‬
‫ت‬
‫س‬
‫ش‬
‫ي‬
‫ن‬
‫ما‬
‫ف‬
‫ل‪،‬‬
‫ما‬
‫ه‬
‫ل‬
‫و‬
‫ا‬
‫بد‬
‫ع‬
‫ق‬
‫ت‬
‫ع‬
‫م‬
‫))‬
‫وسلم‪:‬‬
‫عليه‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ َ‬
‫َ َ ْ‬
‫ّ ّ ُ َ‬
‫َ‬
‫ُ َ‬
‫َ ْ‬
‫َ ِ‬
‫َ ْ ِ ُ ِ‬
‫فَي َ ُ‬
‫ه((‪) .‬ابن ماجة‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2529‬‬
‫كو َ‬
‫ن لَ ُ‬
‫سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬جس نے غلم آزاد کیا اور اس غلم کے پاس مال بھی تھا‪ ،‬تو وہ مال غلم ہی کا ہو‬
‫گا سوائے اس کے کہ مالک )مکاتبت کی( شرط لگا لے تو وہ مال اسی کا ہو جائے گا۔‬

‫ق‬
‫حا َ‬
‫مد الجر ِ‬
‫سس َ‬
‫مط ّل ِ ُ‬
‫م َ‬
‫ن يَ ْ‬
‫م َ‬
‫ن إِ ْ‬
‫حَيى‪ .‬ثنا َ‬
‫ي‪ .‬ثنا ال ُ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫ح ّ‬
‫حدثنا ُ‬
‫ن زَِياٍد‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ب بْ ُ‬
‫م ّ‬
‫سِعيد ُ ب ْ ُ‬
‫مد ب ْ ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن ع َب ْد َ اللهِ َقا َ‬
‫مي ُْر! إ ِّني‬
‫ر‪ ،‬وَ ُ‬
‫ن إ ِب َْرا ِ‬
‫سُعوٍد؛ أ ّ‬
‫ن َ‬
‫م ْ‬
‫ه‪َ:‬يا ع ُ َ‬
‫لل ُ‬
‫ن َ‬
‫هو َ‬
‫جد ّهِ ع ُ َ‬
‫هي َ‬
‫م‪ ،‬ع َ ْ‬
‫مي ْ ٍ‬
‫موْلى اب ْ ِ‬
‫ب َْ ِ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫ً‬
‫َ‬
‫قو ُ‬
‫سو َ‬
‫ل‬
‫ل الله صلى الله عليه وسلم ي َ ُ‬
‫أع ْت َ ْ‬
‫قت ُك ِ‬
‫س ِ‬
‫ل‪)) :‬أّيما َر ُ‬
‫ت َر ُ‬
‫عْتقا هَِنيئا‪ .‬إ ِّني َ‬
‫مع ْ ُ‬
‫جس ٍ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫مسسا ُ‬
‫مالسك؟ )ابسسن ماجسسة‪ ،‬کتسساب‬
‫ه((‪ .‬فسسأ ْ‬
‫م يُ َ‬
‫مسسا َ‬
‫خب ََرِني َ‬
‫ل لس ُ‬
‫ه‪َ ،‬فال َ‬
‫مسسال ُ‬
‫م َ‬
‫س ّ‬
‫أع ْت َقَ غلما‪ ،‬وَل ْ‬
‫العتق‪ ،‬حديث ‪(2530‬‬
‫عمیر سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کے آزاد کردہ غلم تھے۔ انہوں نے عمیر سے کہا‪،‬‬
‫"عمیر! میں تمہیں اپنی خوشی سے آزادی دے رہا ہوں۔ میں نے رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ‬
‫و ٰالہ وسلم کو فرماتے سنا ہے‪' ،‬جو شخص بھی غلم آزاد کرے اور اس کے مال کا ذکر نہ کیسسا‬
‫جائے‪ ،‬تو مال غلم ہی کا ہے۔' یہ تو بتاؤ تمہارے پاس مال کیا ہے؟‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ایک شسسخص ک سے فسسوت ہو جسسانے پسسر اس کسسا‬
‫کوئی وارث نہ ہونے کی صورت میں غلم ہی کو وارث بھی بنایا تھا۔‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا سفيان عن عمرو عن عوسجة عن ابن عباس‪ :‬رجل‬
‫مات على عهد رسول الله صلى الله عليه وسلم ولم يترك وارثا إل عبسسدا هسسو أعتقسسه‬
‫فأعطاه ميراثه‪) .‬مسند احمد‪ ،‬باب ابن عباس(‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم کسے‬
‫زمانے میں ایک شخص فسوت ہو گیسا اور اس نسے سسوائے ایسک غلم کسے اور کسوئی وارث نسہ‬
‫چھوڑا تھا جسے اس نے آزادی دے دی تھی۔ حضور نے اس شخص کی میراث ب ھی غلم کسسو‬
‫دل دی۔‬

‫یہ تمام احادیث اس بات کی شہادت پیش کرتی ہیں کہ غلموں کسسو مسسال رکھن سے اور‬
‫اسے استعمال کرنے کی اجازت دے دی گئی تھی۔ اس ک سے علوہ مسسال غنیمسست میسسں‬
‫سے غلموں کو جو حصہ ملتا تھا وہ بھی انہی کا مال ہوا کرتا تھا۔‬

‫مال غنیمت میں س ے حص ہ‬
‫غلموں کو جنگوں میں مال غنیمت میں سے بھی حصہ دیا جانے لگا۔‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا أبو النضر عن ابن أبي ذئب عن القاسسسم بسسن عبسساس‬
‫عن ابن عباس قال‪ :‬كان رسول الله صلى الله عليه وسلم يعطي المسسرأة والمملسسوك‬
‫من الغنائم ما يصيب الجيش‪) .‬مسند احمد‪ ،‬باب ابن عباس(‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم کسے‬
‫لشکر کو جو بھی مال غنیمت ملتا تھا‪ ،‬آپ اس میں سے خواتین اور غلموں کسسو ب ھی حصسہ‬
‫دیا کرتے تھے۔‬

‫حدثنا قتيبة حدثنا بشر بن المفضل عن محمد بن زيد عن عمير مولى أبي اللحم قال‬
‫شهدت خيبر مع سادتي فكلموا في رسول الله صلى الله عليسسه وسسسلم وكلمسسوه أنسسي‬
‫مملوك۔ قال فأمرني فقلدت السيف‪ ،‬فإذا أنا أجره فأمر لي بشيء من خرتي المتسساع‬
‫وعرضت عليه رقية كنت أرقي بها المجانين‪ ،‬فسسأمرني بطسسرح بعضسسها وحبسسس بعضسسها‬
‫وفي الباب عن بن عباس وهذا حديث حسن صحيح والعمل على هذا عند بعض أهسسل‬
‫العلم ل يسهم للمملوك ولكن يرضخ له بشيء وهو قسسول الثسسوري والشسسافعي وأحمسسد‬
‫‪100‬‬

‫وإسحاق‪) .‬ترمذی‪ ،‬کتاب السير‪ ،‬حديث ‪(1557‬‬
‫ابو اللحم کے آزاد کردہ غلم محمد بن زید بن عمیر کہتے ہیں کہ میسسں اپنسے آقسساؤں کسے سسساتھ‬
‫جنگ خیبر میں شریک تھا۔ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم سسے بسسات کسسی کسہ‬
‫میں ان کا غلم ہوں )یعنی غنیمت میں سے غلم کسسا حصسہ انہیسسں دیسسا جسسائے۔( آپ نسے مج ھے‬
‫تلوار تیار کرنے کا حکم دیا۔ جب میں نے یہ کر دیا تو آپ نے مجھے مال غنیمت میں سے کچھ‬
‫چیزیں دیں۔ میں نے آپ کے سامنے کچھ جنگی قیدی پیش کئے جنہیں میں نے گرفتار کیا ت ھا‬
‫اور وہ پاگل سے معلوم ہوتے تھے۔ آپ نے ان قیدیوں میں سے بعض کو رکھنسے اور بعسسض کسسو‬
‫چھوڑنے کا حکم دیا۔‬
‫ترمذی کہتے ہیں کہ یہ حدیث ابن عباس رضی اللہ عنہما ن سے ب ھی روایسست کسسی ہے اور حسسسن‬
‫صحیح ہے اور اس پر عمل کیا جاتا ہے۔ بعض اہل علم غلموں کو غنیمت میں سسے حص سہ تسسو‬
‫نہیں دیتے لیکن انہیں کچھ نہ کچھ حصہ ضرور دیتے ہیں۔ یہ ثوری‪ ،‬شسسافعی‪ ،‬احمسسد اور اسسسحاق‬
‫کا نقطہ نظر ہے۔‬

‫ل ‪ :‬حدث َنا اب َ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن أ َِبسسي‬
‫ن َ‬
‫حارِ ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن ع َب ْد ِ الّر ْ‬
‫خال ِهِ ال ْ َ‬
‫َ‬
‫ح َ‬
‫ن أِبي ذ ِئ ْ ٍ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ْ‬
‫ب ‪ ،‬عَ ْ‬
‫ّ َ ْ ُ‬
‫م ِ‬
‫ث بْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫دي‪) .‬ابسسن ابسسی شسيبة‪ ،‬حسسديث‬
‫سسي ّ ِ‬
‫ص ّ‬
‫م لِ َ‬
‫مسا ق َ‬
‫قُّرة َ ‪ ،‬قال ‪ :‬ق َ‬
‫سس َ‬
‫ديقُ ك َ‬
‫س َ‬
‫م ِلي أُبو ب َكرٍ ال ّ‬
‫‪(33889‬‬
‫ابو قرہ کہتے ہیں کہ سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے جیسا میرے آقا کو غنیمت میں سے‬
‫حصہ دیا ویسا ہی مجھے بھی دیا۔‬

‫ل ‪ :‬حدث َِني اب َ‬
‫ب ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫ن ع َب ْسدِ‬
‫قا ِ‬
‫ّ‬
‫ن ُ‬
‫َ‬
‫ن أِبي ذ ِئ ْ ٍ‬
‫حَبا ٍ‬
‫س ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ْ ُ‬
‫حد ّث ََنا َزي ْد ُ ب ْ ُ‬
‫ن ع َب ّسسا ٍ‬
‫سم ِ ب ْ ِ‬
‫ب ‪ ،‬عَ ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫سو َ‬
‫عائ ِ َ‬
‫ي‬
‫ن َ‬
‫ش َ‬
‫ة؛أ ّ‬
‫ن َر ُ‬
‫ل اللسهِ صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم أت ِس َ‬
‫ن ع ُْروَةَ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن ن َِيارٍ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫اللهِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫عائ ِ َ‬
‫د‪..‬‬
‫ن أِبي ي َ ْ‬
‫خَرزٍ ‪ ,‬ف َ‬
‫ت َ‬
‫ب ِظ َب ْي َةِ َ‬
‫ش ُ‬
‫ح سّر َوالعَب ْس ِ‬
‫ق ِ‬
‫م ل ِل ُ‬
‫ة ‪ :‬كا َ‬
‫مَها ل ِل ُ‬
‫ق َ‬
‫سس ُ‬
‫مةِ ‪ ,‬وَقال ْ‬
‫حّرةِ َوال َ‬
‫س َ‬
‫)ابن ابی شيبة‪ ،‬حديث ‪(33895‬‬
‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم کسے پسساس‬
‫ظبیہ کے مقام پر خرز لئی گئی۔ آپ نے اسے ایک آزاد اور ایک لونڈی میسسں تقسسسیم کسسر دیسسا۔‬
‫میرے والد )ابوبکر( بھی آزاد اور غلم دونوں کو حصہ دیا کرتے تھے۔‬

‫وراثت میں حص ہ‬
‫مالک کے مرنے کی صورت میں اگرچہ اس کے غلم کا کوئی حصہ قرآن مجیسسد میسسں‬
‫مقرر نہیں کیا گیا لیکن رسول اللہ صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسے اسسسوہ حسسسنہ سسے‬
‫معلوم ہوتا ہے کہ دیگر وارث نہ ہونے کی صورت میں آپ نے غلمسسوں کسسو مالسسک کسسی‬
‫میراث میں سے حصہ دیا۔‬
‫حدث َنا حسين بن ع َل ِي ‪ ،‬ع َن زائ ِدة َ ‪ ،‬ع َن محمد بن ع َبد الرحم سن ب س َ‬
‫َ َ‬
‫ن‬
‫ْ َ َ‬
‫ّ‬
‫َ ّ َ ُ َ ْ ُ ْ ُ‬
‫ن ُأب ِسسي لي ْلسسى ‪ ،‬ع َس ِ‬
‫ْ ُ َ ّ ِ ْ ِ ْ ِ ّ ْ َ ِ ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن َ‬
‫ن َ‬
‫يأ ْ‬
‫دادٍ‬
‫شس ّ‬
‫م َ‬
‫ن اب ْن َةِ َ‬
‫ش ّ‬
‫ال ْ َ‬
‫خس ُ‬
‫ح ّ‬
‫مَزة َ قال ُ‬
‫ح ْ‬
‫مد ٌ ‪ :‬وَه ِ س َ‬
‫حك َم ِ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ت اب ْس ِ‬
‫داد ٍ ‪ ،‬ع َ ِ‬
‫ن ع َب ْد ِ اللهِ ب ْ ِ‬
‫ُ‬
‫موًْلى ِلي وَت ََر َ‬
‫سو ُ‬
‫ل اللهِ صلى الله عليسسه وسسسلم‬
‫ه ‪ ،‬فَ َ‬
‫م َر ُ‬
‫ق َ‬
‫س َ‬
‫ك اب ْن َت َ ُ‬
‫ت َ‬
‫ما َ‬
‫ت‪َ :‬‬
‫مهِ ‪َ -‬قال َ ْ‬
‫ل ّ‬
‫جع َ َ‬
‫ف‪) .‬مصسسنف ابسسن ابسسی شسسیبہ‪ ،‬کتسساب‬
‫صس َ‬
‫ص َ‬
‫ن اب ْن َت ِهِ ‪ ،‬فَ َ‬
‫مال َ ُ‬
‫َ‬
‫ف وَل ََها الن ّ ْ‬
‫ل ِلي الن ّ ْ‬
‫ه ب َي ِْني وَب َي ْ َ‬
‫المیراث‪ ،‬حدیث ‪(31783‬‬

‫اخت بن شداد کی والدہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ میرے آقا فوت ہو گئے اور ان کی صسسرف‬
‫ایک ہی بیٹی زندہ تھی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ان کا ترکہ میسسرے اور ان کسسی‬
‫بیٹی کے درمیان اس طرح تقسیم فرمایا کہ آدھا ان کی بیٹی کو مل اور آدھا مجھے۔‬

‫صحابہ کرام میں بھی یہی عمل جاری رہا۔‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن عَ َ‬
‫ن أ َِبي ب ِ ْ‬
‫حد ّث ََنا هُ َ‬
‫ت‬
‫شسرٍ ‪َ ،‬‬
‫سسائ ِب َ ً‬
‫ن َر ُ‬
‫طساٍء ‪ :‬أ ّ‬
‫َ‬
‫ه َ‬
‫مسسا َ‬
‫ة ‪ ،‬فَ َ‬
‫مسا َلس ُ‬
‫جل ً أع ْت َسقَ غ ُل َ ً‬
‫شي ْ ٌ‬
‫عس ْ‬
‫م ‪ ،‬عَ ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ت‬
‫ن‬
‫سا‬
‫س‬
‫ك‬
‫سا‬
‫س‬
‫م‬
‫ن‬
‫إ‬
‫‪،‬‬
‫ن‬
‫بو‬
‫ي‬
‫س‬
‫س‬
‫ي‬
‫ل‬
‫م‬
‫ل‬
‫س‬
‫س‬
‫ال‬
‫ل‬
‫س‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ن‬
‫إ‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫سا‬
‫س‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ف‬
‫؟‬
‫د‬
‫عو‬
‫س‬
‫س‬
‫م‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ا‬
‫ل‬
‫ئ‬
‫س‬
‫ف‬
‫‪،‬‬
‫مال‬
‫ك‬
‫ر‬
‫ت‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫ْ ُ َ ْ ُ ٍ‬
‫ِ ُ َ ُّ َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ ْ‬
‫ّ َ‬
‫َ‬
‫وَ َ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ب أهْ ُ‬
‫ها هَُنا‬
‫ميَراث ِهِ ‪َ ،‬وإل ّ َفأرِن ِهِ َ‬
‫س بِ ِ‬
‫ل ال َ‬
‫سي ّ ُ‬
‫يُ َ‬
‫ي ن ِعْ َ‬
‫ت َ‬
‫جاه ِل ِي ّةِ ‪ ،‬أن ْ َ‬
‫موْل َه ُ وَوَل ِ ّ‬
‫مت ِهِ وَأوْلى الّنا ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ل‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب المیراث‪ ،‬حدیث ‪(32078‬‬
‫وََرث َ ٌ‬
‫ة كِثيٌر‪ .‬ي َعِْني ‪ :‬ب َْيت ال َ‬
‫ما ِ‬
‫عطا کہتے ہیں کہ ایک شخص نے اپنے غلم کو بطور سائبہ )ایک قسم کا وقسسف( آزاد کسسر دیسسا۔‬
‫‪101‬‬

‫اس کے بعد وہ فوت ہو گیا اور ترکے میں کچھ مال چھوڑ دیا۔ عبداللہ بن مسسسعود رضسسی الل سہ‬
‫عنہ سے اس کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے فرمایا‪" :‬اھل اسلم میں تو سائبہ کی رسسسم‬
‫نہیں ہے‪ ،‬ہاں اھل جاہلیت سائبہ بنایا کرتے تھے۔ تم اس کے آزاد کسسردہ غلم ہو‪ ،‬اس ک سے ولسسی‬
‫نعمت ہو اور سب لوگوں سے زیادہ اس کی وراثت کے حقسسدار ہو۔ اگسسر تسسم اس کسسا یسہ ورث سہ‬
‫چھوڑنا چاہو تو پھر اس کے وارثوں کی تعداد بہت زیادہ ہے۔" یعنی بیسست المسسال میسسں ی سہ ورث سہ‬
‫جمع کروا دیا جائے گا اور اس کے وارث تمام شہری ہوں گے۔‬

‫دینی ذم ہ داریوں میں تخفیف‬
‫چونکہ غلموں پر اپنے آقاؤں کی خدمت کی ذمہ داری تھی‪ ،‬اس وجہ سے انہیسسں دیسسن‬
‫اسلم کی بیشتر ذمہ داریوں سے مستثنی قرار دے دیسسا گیسسا۔ نمسساز پڑھنسسا ان ک سے لئے‬
‫لزم تھا مگر ان کے ذمے زکوۃ کی ادائیگی نہیں تھی۔ حج اور جہاد بھی ان پر فسسرض‬
‫نہ تھا۔ ہاں اگر ان کا آقا اجازت دے دیتا تو یہ غلم بھی اپنی مرضی سے حج یسسا ج ہاد‬
‫کے لئے جا سکتے تھے‪ ،‬ان پر اس کی ذمہ داری نہیں تھی۔‬

‫جرم کرن ے کی صورت میں نصف سزا‬
‫ان تمام حقوق کے باوجود غلموں کو کسی بھی جرم کی پاداش میسسں آزاد شسسخص‬
‫کی نسبت نصف سزا دی جاتی تھی۔ قرآن مجید میں بدکاری کے جرم میں لونڈیوں‬
‫کو آزاد خواتین کی نسبت نصف سزا دینے کا حکم دیا گیا تھا۔‬
‫فَإَذا أ ُحصن فَإ َ‬
‫ن ال َْعسس َ‬
‫ح َ‬
‫ب‪) .‬قسسرآن‬
‫ن بِ َ‬
‫ص ُ‬
‫فا ِ‬
‫ت ِ‬
‫صَنا ِ‬
‫م ْ‬
‫ْ ِ ّ ِ ْ‬
‫ما ع ََلى ال ْ ُ‬
‫ف َ‬
‫ذا ِ‬
‫ح َ‬
‫ن نِ ْ‬
‫م ْ‬
‫شةٍ فَعَل َي ْهِ ّ‬
‫ن أت َي ْ َ‬
‫ِ‬
‫‪(4:25‬‬
‫جب لونڈیوں کو نکاح میں محفوظ کر دیا جائے اور اس کے بعد بھی وہ بدکاری کی مرتکسسب‬
‫ہوں تو ان کی سزا آزاد خواتین کی نسبت آدھی ہے۔‬

‫اس آیت سے یہ واضح ہے کہ لونڈیوں کو یہ نصف سزا اس صورت میں دی جائے گسسی‬
‫جب وہ شادی شدہ ہو جائیں۔ اگر وہ غیر شادی شدہ ہوں اور بدکاری کا ارتکسساب کسسر‬
‫بیٹھیں تو ان کی سزا کے بارے میسسں قسسدیم ا ہل علسسم کسے مسسابین اختلف ہے۔ سسسیدنا‬
‫عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کے نزدیک ایسی صسسورت میسسں انہیسسں کچسھ ت ھوڑی‬
‫بہت سزا محض تادیب کے لئے دے دی جائے گی لیکن ان پر شرعی حد جاری نہ کسسی‬
‫جائے گی۔ )سنن سعید بن منصور بحوالہ تفسیر ابن کثیر آیت ‪(4:25‬‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے اسسسی پسسر‬
‫عمل فرمایا اور اس پر قیاس کرتے ہوئے غلموں کے دوسرے جرائم کسسی سسسزا ب ھی‬
‫نصف ہی مقرر فرمائی۔‬
‫َ‬
‫مال ِ ٌ‬
‫ه قَسسا َ‬
‫زيسزِ ع َب ْسسدا ً فِسسي فِْري َسةٍ‬
‫ن ع َب ْسد ِ ال ْعَ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫َ‬
‫جل َسد َ ع ُ َ‬
‫ن أِبي الّزَناِد‪ ،‬أن ّ ُ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫مسُر ب ْس ُ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ت‬
‫ن ذل ِك ف َ‬
‫ن َ‬
‫ن َرِبيعَ َ‬
‫عا ِ‬
‫ن‪ .‬قال أُبو الّزَنادِ ‪ :‬ف َ‬
‫قسسال ‪ :‬أد َْرك س ُ‬
‫سأل ُ‬
‫ثَ َ‬
‫ة عَ ْ‬
‫ت ع َب ْد َ اللهِ ب ْ َ‬
‫ماِني َ‬
‫مر ِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫خ ّ‬
‫جل َد َ ع َب ْسسدا ً فِسسي‬
‫خل َ َ‬
‫ن عَ ّ‬
‫ن َوال ْ ُ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫حدا ً َ‬
‫تأ َ‬
‫م َ‬
‫فا َ‬
‫ما َ‬
‫ما َرأي ْ ُ‬
‫جّرا‪ ،‬فَ َ‬
‫فاَء هَل ُ ّ‬
‫ب وَع ُث ْ َ‬
‫عُ َ‬
‫طا ِ‬
‫ن بْ َ‬
‫مَر ب ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‪) .‬موطا مالک‪ ،‬کتاب الحدود‪ ،‬حديث ‪(2396‬‬
‫فِْري َةٍ أك ْث ََر ِ‬
‫ن أْرب َِعي َ‬
‫م ْ‬
‫عمر بن عبدالعزیز رحمۃ اللہ علیہ نے بدکاری کا الزام عائد کرنے کے جرم میں ایسسک غلم کسسو‬
‫اسی کوڑے کی سزا دی )جو کہ آزاد کی سزا ہے۔( ابو الزناد کہتے ہیں ک سہ میسسں ن سے اس س سے‬
‫متعلق عبداللہ بن عامر بن ربیعۃ اس سے پوچھا تو وہ کہنے لگے‪" ،‬عمر بن خطاب اور عثمان‬
‫بن عفان رضی اللہ عنہما اور دیگر خلفاء کے سامنے بھی ایسے مقدمے لئے گئے ت ھے۔ ان ہوں‬
‫نے قذف کے مقدمے میں کسی غلم کو چالیس کوڑوں سے زائد کی سزا نہ دی تھی۔"‬

‫دارقطنی کی ایک روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم‬
‫چوری وغیرہ کے جرم میں اکثر اوقات غلموں پر سزا نافذ ہی نہ کیا کرتے تھے۔ اگسسر‬
‫وہ غلم بار بار چوری کرنے سے باز نہ آتا تب اس پسسر چسسوری کسسی سسسزا نافسسذ فرمایسسا‬
‫‪102‬‬

‫کرتے تھے۔ )دارقطنی‪ ،‬کتاب الحدود(‬

‫مسلمانوں ک ے دشمن کو امان دین ے کا حق‬
‫اسلم میں چونکہ ہر مسسلمان کسو برابسر درجسہ عطسا کیسا گیسا ہے‪ ،‬اس وجسہ سسے ہر‬
‫مسلمان کو اس بات کی اجازت ہے کہ اگر دشمن کا کوئی فرد کسی ایک مسلمان‬
‫کی امان حاصل کر کے بھی مسلم ملک میں آ جائے تو حکومت پر لزم ہو گسسا ک سہ وہ‬
‫اس کی دی گئی امان کا احترام کرتے ہوئے اس دشمن کے خلف کوئی کسساروائی ن سہ‬
‫کرے۔ ابن جوزی لکھتے ہیں‪:‬‬
‫ويصح أمان المسلم العاقل سواء كسسان ذكسسرا أو أنسسثى حسسرا أو مملوكسسا‪) .‬ابسسن جسسوزی‪،‬‬
‫کشف المشکل من حديث الصحيحين(‬
‫ہر صاحب عقل مسلمان کی دی گئی امان درست ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کک سہ وہ‬
‫مرد ہو یا خاتون‪ ،‬آزاد ہو یا غلم۔‬

‫غلموں ک ے سیاسی حقوق‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غلموں کا درجہ اس قدر بلند کسسر دیسسا ت ھا کسہ‬
‫آپ نے مسلمانوں کو یہ حکم بھی دیا کہ اگر ایک حبشی غلم بھی ان پر حکمران بنا‬
‫دیا جائے تو وہ اس کی بھی اطاعت کریں۔‬
‫وحدثنا أبو بكر بن أبي شيبة وعبدالله بن براد الشعري وأبو كريب‪ .‬قالوا‪ :‬حسسدثنا ابسسن‬
‫إدريس عن شعبة‪ ،‬عن أبي عمران‪ ،‬عن عبدالله بن الصامت‪ ،‬عن أبسسي ذر‪ .‬قسسال‪ :‬إن‬
‫خليلي أوصسساني أن أسسسمع وأطيسسع‪ .‬وإن كسان عبسسدا مجسسدع الطسسراف‪) .‬مسسسلم‪ ،‬کتساب‬
‫المارۃ‪ ،‬حديث ‪(4755‬‬
‫سیدنا ابوذر غفاری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں‪" ،‬میرے دوست )رسول اللہ صسسلی الل سہ علی سہ‬
‫و ٰالہ وسلم( نے مجھے وصیت فرمائی کہ میں حکمران کی بات سسسنوں اور اس کسسی اطسساعت‬
‫کروں اگرچہ وہ ایک ایسا غلم ہو جس کے ہاتھ پاؤں مخالف سمتوں میں کٹے ہوئے ہوں۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے یہ بات صرف سیدنا ابوذر غفسساری رضسسی اللسہ‬
‫عنہ ہی کو نہ ارشاد فرمائی بلکہ حدیث ‪ 4757‬کے مطسسابق آپ ن سے صسسحابہ کسسرام ک سے‬
‫سب سے بڑے اجتماع حجۃ الوداع کے موقع پسسر ب ھی ی ہی حکسسم دیسسا۔ اس حکسسم کسسی‬
‫عملی صورت اس وقت سامنے آئی جب سیدنا عمر رضی اللہ عنہ اپنے بعد آنے والے‬
‫خلیفہ کا فیصلہ کرنا چاہتے تھے۔ آپ نے اس منصسب کسے لئے دو افسراد کسسو سسسب سسے‬
‫زیادہ مناسب قرار دیا‪ ،‬ایک امین المت سیدنا ابوعبیسسدہ رضسسی الل سہ عن سہ اور دوسسسرے‬
‫سیدنا ابوحذیفہ کے آزاد کردہ غلم سالم رضی اللہ عن ہم۔ یسہ دونسوں حضسرات سسیدنا‬
‫عمر رضی اللہ عنہ سے پہلے ہی وفات پا گئے تھے‪ ،‬اس وج سہ س سے آپ ن سے پ ھر عشسسرہ‬
‫مبشرہ کے چھ صحابہ میں سے خلیفہ کے انتخاب کی وصیت کی۔‬
‫صحابہ کرام رضی اللہ عنہم غلموں کے پیچھے نماز پڑھ لینے میں بھی کوئی حرج‬
‫محسوس نہ کیا کرتے تھے۔ اس دور میں نماز کی امامت و ہی کیسسا کرتسسا ت ھا جسسو ان‬
‫میں دین‪ ،‬علم اور کردار کے معاملے میں سب سے بہتر سسسمجھا جاتسسا ت ھا اور اسسسی‬
‫شخص کو حکومتی عہدوں کے لئے بھی زیادہ موزوں تصور کیا جاتا تھا۔‬
‫عبد الرزاق عن الثوري وإسماعيل بن عبد الله عن داود بن أبي هند عسسن أبسسي نضسسرة‬
‫عن أبي سعد مولى بني أسيد قال تزوجت وأنا مملوك فدعوت أصحاب النسسبي صسسلى‬
‫الله عليه وسلم أبو ذر وبن مسعود وحذيفة فحضرت الصلة فتقدم حذيفة ليصلي بنا‬
‫فقال له أبو ذر أو غيسسره ليسسس ذلسسك لسسك فقسسدموني وأنسسا مملسسوك فسسأممتهم‪) .‬مصسسنف‬
‫عبدالرزاق؛ حديث ‪(7015‬‬
‫‪103‬‬

‫بنو اسید کے آزاد کردہ غلم ابو سعد رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں اب ھی غلم ہی ت ھا جسسب‬
‫میں نے شادی کی۔ میں نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے صحابہ ابسسوذر‪ ،‬عبسسداللہ بسسن مسسسعود‬
‫اور حذیفہ رضی اللہ عنہم کی دعوت کی۔ نماز کا وقت آیا تو حذیفہ رضی اللہ عنہ امامت کے‬
‫لئے آگے بڑھنے لگے۔ انہیں ابوذر یا عبداللہ نے اس سے روکا اور مجھے امسسامت کرن سے ک سے لئے‬
‫کہا۔ میں نے آگے بڑھ کا امامت کی جبکہ میں ابھی غلم ہی تھا۔‬

‫مدینہ میں اسلم کے آغاز کے وقت ہی سیدنا سسسالم مسسولی ابوحسسذیفہ رضسسی اللسہ عنسہ‬
‫نماز کی امامت کیا کرتے تھے۔‬

‫آقا اور مالک ک ے تعلقات میں ب ہتری‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ایک طرف غلموں کو بہت س سے حقسسوق دی سے‬
‫اور ان کے مالکوں کو ان سے اچھا سسسلوک کرن سے کسسا حکسسم دیسسا تسسو دوسسسری طسسرف‬
‫غلموں پر بھی یہ ذمہ داری عائد فرمائی کہ انہیں اپنے آقا کا خیر خواہ ہونا چسساہیے اور‬
‫اس کے ساتھ خیانت نہیں کرنی چاہیے۔ اس کا مقصد یہی ت ھا ک سہ آقسسا اور مالسسک ک سے‬
‫تعلقات خلوص پر مبنی ہوں اور برادرانہ سطح پر آ جائیں۔ بالکل یہی تعلیمات ہمیں‬
‫سیدنا عیسی علیہ الصلوۃ والسلم کے ہاں بھی ملتی ہیں‪:‬‬
‫حدثني أبو الطاهر وحرملة بن يحيى‪ .‬قال‪ :‬أخبرنا ابن وهب‪ .‬أخبرني يسسونس عسسن ابسسن‬
‫شهاب‪ .‬قال‪ :‬سمعت سعيد بن المسيب يقسسول‪ :‬قسال أبسسو هريسسرة‪ :‬قسسال رسسسول اللسه‬
‫صلى الله عليه وسلم )للعبد المملوك المصلح أجران(‪ .‬والذي نفس أبي هريرة بيده!‬
‫لول الجهاد في سبيل الله‪ ،‬والحج‪ ،‬وبسر أمسي‪ ،‬لحببست أن أمسوت وأنسا مملسوك‪ .‬قسال‪:‬‬
‫وبلغنا؛ أن أبا هريرة لم يكن يحج حتى ماتت أمه‪ ،‬لصسسحبتها‪) .‬مسسسلم‪ ،‬کتسساب اليمسسان‪،‬‬
‫حديث ‪(4320‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کسہ رسسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬نیک غلم کے لئے دوگنا اجر ہے۔" ابوھریرہ کہتے ہیں‪ :‬خدا کی قسم جس کسسے قبضسسے‬
‫میں ابوھریرہ کی جان ہے‪ ،‬اگر اللہ کی راہ میں جہاد‪ ،‬حج اور والدہ کی خسسدمت کسسا معسساملہ ن سہ‬
‫ہوتا تو میں یہ پسند کرتا کہ غلم ہی بن کسسر مسسروں )تسساکہ دوگنسسا اجسسر مجھہہے ملسے۔( ابسسوھریرہ‬
‫رضی اللہ عنہ نے اپنی والدہ کی خدمت کے لئے ان کی وفات سے پہلے حج بھی نہ کیا تھا۔‬

‫اسی حدیث کی دوسری روایت میں غلم کو دوگنا اجر دیے جانے کی وج سہ ی سہ بتسسائی‬
‫گئی تھی کہ وہ اپنے آقا کا حق بھی ادا کرتا ہے اور اپنے اصل مالک یعنی اللہ تعالی کا‬
‫حق بھی ادا کرتا ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسلم نسے غلمسسوں کسو یسہ تاکیسسد‬
‫کرنے کے ساتھ ساتھ مالکوں کو بھی ان سے حسن سلوک کا حکم دیا۔ ہم اوپر ب ہت‬
‫سی احادیث بیان کر چکے ہیں۔ دو اور ایمان افروز احادیث یہ ہیں‪:‬‬
‫َ‬
‫د‪َ ،‬قا َ‬
‫ن أ َِبي َ‬
‫مِغيسَرةَ‬
‫شي ْب َ َ‬
‫م ٍ‬
‫ما َ‬
‫س َ‬
‫ل‪ :‬ح ّ‬
‫م َ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫دثنا إ ِ ْ‬
‫ن ُ‬
‫سسل َي ْ َ‬
‫ح ّ‬
‫ي ُ‬
‫ن ع َس ْ‬
‫حاقُ ب ْ ُ‬
‫ة وَع َل ِ ّ‬
‫دثنا أُبو ب َك ْرِ ب ْ ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ل‪ :‬قَسسا َ‬
‫ق؛ قَسسا َ‬
‫ل‬
‫سب َ ِ‬
‫صس ّ‬
‫ن فَْرقَد ٍ ال ّ‬
‫م ْ‬
‫ن ُ‬
‫ن ُ‬
‫ن أب ِسسي ب َكسرٍ ال ّ‬
‫مّرة َ الطي ّ ِ‬
‫ب‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ي‪ ،‬ع َ ْ‬
‫خ ّ‬
‫م‪ ،‬ع َ ْ‬
‫دي ِ‬
‫سل ِ ٍ‬
‫بْ ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫سسسو َ‬
‫خ ُ‬
‫سو ُ‬
‫ل‬
‫ل اللهِ صلى الله عليه وسلم ))ل ي َد ْ ُ‬
‫جن ّ َ‬
‫ملك س ِ‬
‫ل ال َ‬
‫ة(( قَسسالوا‪ :‬ي َسسا َر ُ‬
‫ة َ‬
‫َر ُ‬
‫يُء ال َ‬
‫س ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‬
‫سأ ْ‬
‫م َ‬
‫ملو ِ‬
‫الل ِ‬
‫خب َْرت ََنا أ ّ‬
‫موهُ ْ‬
‫م فأكرِ ُ‬
‫مى؟ قال ))ن َعَ ْ‬
‫ن وَي ََتا َ‬
‫م ْ‬
‫مم ِ َ‬
‫ة أكثُر ال َ‬
‫ن هذ ِهِ ال ّ‬
‫ه! ألي ْ َ‬
‫كي َ‬
‫م‪ .‬وأ َط ْعموهم مما تأ ْ‬
‫ك َك َرامة أ َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫س‬
‫ر‬
‫ف‬
‫))‬
‫ل‬
‫قا‬
‫يا؟‬
‫ن‬
‫د‬
‫ال‬
‫في‬
‫نا‬
‫ع‬
‫َ‬
‫ف‬
‫ن‬
‫ي‬
‫ما‬
‫ف‬
‫لوا‪:‬‬
‫قا‬
‫ن((‪.‬‬
‫لو‬
‫ك‬
‫ك‬
‫د‬
‫ل‬
‫و‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫َ َْ ُ َ ِ‬
‫ْ ِ ّ َ‬
‫َّْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ ٌ‬
‫َ َ ِ ْ ِ ْ َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫خسسو َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قات ِ ُ‬
‫ك )ابسسن‬
‫سإذا‬
‫س‬
‫ف‬
‫ك‪.‬‬
‫س‬
‫في‬
‫ك‬
‫ي‬
‫ك‬
‫س‬
‫ك‬
‫لو‬
‫م‬
‫م‬
‫ه‪.‬‬
‫س‬
‫الل‬
‫ل‬
‫بي‬
‫س‬
‫في‬
‫ه تُ َ‬
‫صسّلى‪ ،‬فَهُسوَ أ َ ُ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ل ع َل َي ْهِ‬
‫َ‬
‫َ ْ‬
‫ت َْرت َب ِط ُ ُ‬
‫َ‬
‫َ ِ ِ‬
‫ماجة‪ ،‬کتاب الدب‪ ،‬حديث ‪(3691‬‬
‫سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم نسسے‬
‫فرمایا‪" ،‬برے مالک جنت میں داخل نہ ہوں گے۔" لوگوں نے عرض کیسسا‪" ،‬یسسا رسسسول اللسہ! کیسسا‬
‫آپ نے ہمیں یہ نہیں بتایا تھا کہ ہماری امت میں )دوسری قوموں کی نسسسبت( زیسسادہ غلم اور‬
‫یتیم ہوں گے۔"‬
‫آپ نے فرمایا‪" ،‬ہاں‪ ،‬ان غلموں کو ویسی ہی عزت دو جیسی تسسم اپنسسی اولد کسسو دیت سے ہو۔‬
‫انہیں وہی کھلؤ جو تم خود کھاتے ہو۔" عرض کیا‪" ،‬ہمارے لئے دنیا میں فسسائدے کسسی کیسسا چیسسز‬
‫‪104‬‬

‫ہے؟" فرمایا‪" ،‬ایسے گھوڑے جن پر تم زین کس کر اللسہ کسسی راہ میسسں جہ ہاد کسسرو اور تمہ ہارے‬
‫غلم جو تمہارے لئے کافی ہوں۔ اگر وہ نماز پڑھتے ہوں تو وہ تمہارے بھائی ہیں۔"‬

‫عَ َ‬
‫ق قال رسول الله صلى الله عليه وسلم ل يدخل الجنسسة بخيسسل ول‬
‫ص ّ‬
‫ن أِبي ب َك ْرٍ ال ّ‬
‫ْ‬
‫دي ِ‬
‫خب ول خائن ول سيء الملكة وأول من يقرع باب الجنة المملوكون إذا أحسنوا فيما‬
‫بينهم وبين الله عز وجل وفيما بينهم وبين مواليهم‪) .‬مسسسند احمسسد‪ ،‬مطسسالب العاليسسة‪،‬‬
‫باب ابوبکر(‬
‫سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم نسسے‬
‫فرمایا‪" ،‬جنت میں بخیل‪ ،‬بدمزاج‪ ،‬بددیانت اور غلموں سے برا سلوک کرنے وال سے داخسسل ن سہ‬
‫ہوں گے۔ جنت کا دروازہ سب سے پہلے ان غلموں کے لئے کھول جائے گا جو اپنے اور اللہ کسسے‬
‫معاملے میں اور اپنے اور اپنے مالکان کے معاملے میں اچھے ہوں گے۔"‬

‫جیسا کہ ہم بیان کر چکے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کسسو غلمسسوں کسسا‬
‫اتنا خیال تھا کہ آپ نے اس حالت میں بھی جب آپ کی روح نکلنے کسسا عمسسل شسسروع‬
‫ہو چکا تھا‪ ،‬ان سے اچھا سلوک کرنے کی وصیت فرمائی۔ رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے برے غلموں سے بھی اچھا سلوک کرنے کا حکم دیا۔‬
‫وعن أبي هريرة قال‪ :‬قال رسول الله صلى الله عليه وسلم‪" :‬ما مسن صسدقة أفضسل‬
‫من صدقة تصدق بها على مملوك عنسسد مليسسك سسسوء"‪ .‬رواه الطسسبراني فسسي الوسسسط‪.‬‬
‫)مجمع الزوائد‪ ،‬کتاب العتق(‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کسہ رسسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬اس سے زیادہ کوئی صدقہ افضل نہیں ہے کہ کوئی اپنے برے غلموں پر خرچ کرے۔"‬

‫وعن ابن عمر أن رجل ً أتى رسسسول اللسسه صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم فقسسال‪ :‬إن خسسادمي‬
‫يسيء ويظلم أفأضربه؟ قال‪" :‬تعفو عنه كل يوم سبعين مرة"‪ .‬قلت‪ :‬رواه الترمسسذي‬
‫باختصار‪ .‬رواه أبو يعلى ورجاله ثقات‪) .‬مجمع الزوائد‪ ،‬کتاب العتق(‬
‫سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ ایک شخص رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم کے پاس آ کر کہنے لگا‪" ،‬میرے غلم غلط کام کرتے ہیسسں اور بعسسض اوقسسات )مج سھ پسسر(‬
‫زیادتی بھی کر بیٹھتے ہیں تو کیا میں انہیں مار سکتا ہوں؟" آپ نے فرمایسسا‪" ،‬اس سسے زیسسادہ‬
‫کوئی صدقہ افضل نہیں ہے کہ کوئی اپنے برے غلموں پر خرچ کسرے۔" آپ نسے فرمایسسا‪" ،‬انہیسسں‬
‫روزانہ ستر مرتبہ معاف کر دیا کرو۔"‬

‫غلموں کی خرید و فروخت س ے‬
‫متعلق اصلحات‬
‫عہد رسالت سے پہلے غلموں کی خرید و فروخت ایک "انسان" کی خرید و فروخت‬
‫تھی جسے بھیڑ بکریوں کی طرح خریدا اور بیچا جاتا تھا۔ رسول اللہ صلی الل سہ علی سہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے غلموں کے حقوق سے متعلق جو اصسسلحات عمل ً اپنسے معاشسسرے میسسں‬
‫رائج فرمائی تھیں‪ ،‬ان کا نتیجہ یہ نکل کہ غلموں کی خرید و فروخت‪ ،‬اب انسان کی‬
‫نہیں بلکہ محض اس کی "خدمات" کی خرید و فروخت بن کر رہ گئی کیونکہ کسسسی‬
‫بھی آقا کو غلم پر جسمانی تصرف کا کوئی حق نہ رہ گیا تھا۔ ایک شسسخص کسسو اگسسر‬
‫غلم کی خدمات کی ضرورت نہیں ہے تو وہ ان خدمات کو کسی دوسرے کی طرف‬
‫منتقل کر دے۔ یہ معاملہ کچھ اسی طرح کا تھا کہ جیسسے آج کسسل کسسوئی کمپنسسی اپنسے‬
‫ملزم کو کام کرنے کے لئے دوسری کمپنی میں بھیج دے۔‬
‫غلموں کی اس منتقلی سے متعلق ایک اہم قانون بنایا گیا اور وہ یسہ ت ھا کسہ اس‬
‫منتقلی کے دوران غلم کے خاندان کو کسی صورت تقسیم نسہ کیسسا جسسائے بلکسہ انہیسسں‬
‫اکٹھا رکھا جائے۔‬
‫‪105‬‬

‫حدثنا عمر بن حفص بن عمر الشيباني أخبرنا عبد الله بسسن وهسسب أخسسبرني حيسسي عسسن‬
‫أبي عبد الرحمن الحبلي عن أبي أيسسوب قسسال سسسمعت رسسسول اللسسه صسسلى اللسسه عليسسه‬
‫وسلم يقول من فرق بين والدة وولدها فرق الله بينه وبين أحبتسسه يسسوم القيامسسة۔ قسسال‬
‫أبو عيسى وفي الباب عن علي وهذا حديث حسن غريب۔ والعمل على هذا عند أهسسل‬
‫العلم من أصحاب النبي صلى الله عليه وسلم وغيرهم كرهسسوا التفريسسق بيسسن السسسبي‬
‫بين الوالدة وولدها وبين الولد والوالد وبين الخسسوة ۔ )ترمسسذی‪ ،‬کتسساب الجهسساد‪ ،‬حسسديث‬
‫‪(1566‬‬
‫سیدنا ابو ایوب انصاری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫نے ارشاد فرمایا‪" ،‬جس نے ماں اور اس کے بچے کو الگ کیا‪ ،‬اللہ قیامت کے دن اس کو اس‬
‫کے پیاروں سے الگ کر دے گا۔"‬
‫ترمذی کہتے ہیں‪" ،‬یہ حدیث حسن غریب درجے کی ہے اور اس کی روایت سیدنا علی رضی‬
‫اللہ عنہ نے بھی کی ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے علماء صحابہ اور دیگر ا ہل علسم کسا‬
‫عمل بھی یہی ہے۔ وہ اس بات کو سخت ناپسند کرتے تھے کہ غلموں میں ماں اور بچے‪ ،‬باپ‬
‫اور بچے اور بہن بھائیوں کو علیحدہ کر دیا جائے۔‬

‫اس پابندی نے عملی طور پر بردہ فروش طبقہ جس سے "نخسساش" ک ہا جاتسسا ت ھا‪ ،‬ک سے‬
‫مفادات پر کاری ضرب لگائی۔ اگر کوئی کسی غلم کو ایک جگہ سے دوسسسری جگ سہ‬
‫منتقل بھی کرنا چاہے تو اس کے لئے لزم تھا کہ وہ غلم کی پوری فیملی کو خریسسدے‬
‫اور پھر اسے دوسرے شہر میں منتقل کرے۔‬
‫بعض لوگوں کے ذہن میں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ اس دور میں غلموں کی خرید‬
‫و فروخت سے قطعی طور پر منع کیوں نہ کیا گیا؟ یہ سسسوال دراصسسل اس وجسہ سسے‬
‫پیدا ہوتا ہے کہ ہمارے سامنے وہ صورتحال نہیں ہے جس میں یہ معاملہ ہو رہا ت ھا۔ اس‬
‫وجہ سے ہمیں موجسسودہ دور کسسی مثسسال کسسو سسسامنے رکھتسے ہوئے اس صسسورتحال کسسی‬
‫وضاحت کرنا ہو گی۔‬
‫فرض کر لیجیے کہ ایک شخص کسی وجہ سسے اپنسسا کاروبسسار ختسسم کسسر ر ہا ہے یسسا‬
‫کسی اور وجہ سے اسے ملزمین کی ضرورت نہیں ہے۔ اس صورت میں کیا اس کے‬
‫لئے یہ ممکن ہو گا کہ وہ تاعمر اپنے ملزمیسسن کسسو تنخسسواہیں ادا کرتسسا ر ہے؟ مالسسک اور‬
‫ملزمین کے لئے بہترین صورت یہی ہو گی کہ وہ ان کی ملزمت کو کسی اور کمپنی‬
‫میں منتقل کر دے۔ اس طرح سے ملزمین بھی فوری طور پر بے روزگار نہ ہوں گسے‬
‫اور مالک بھی اپنے کاروبار کو کم سے کم نقصان پر بند کر سکے گا۔‬
‫بالکل یہی صورتحال اس دور میں تھی۔ ایک شخص کا کاروبار ختسسم ہو گیسسا اور‬
‫اسے اب غلم کی ضرورت نہیں رہی۔ وہ اس غلم کا کیا کرے؟ اس کے سسسامنے تیسسن‬
‫ہی راستے ہیں‪ :‬یا تو وہ اس غلم کو ساری عمر بٹھا کر اس کے اخراجات برداشسست‬
‫کرتا رہے یا پھر اسے آزاد کرے یا پھر اس کی خدمات کسی دوسسسرے کسسو منتقسسل کسسر‬
‫دے۔ پہلی صورت تو بہرحال مالک کے لئے ممکسسن نسہ ہو گسسی۔ دوسسسری صسسورت دیسسن‬
‫اسلم کے مطابق سب سے بہتر ہے لیکن مسئلہ یہ ہے کہ جس مالک نے ایک بڑی رقم‬
‫لگا کر غلم کی خدمات حاصل کی تھیں اور اس کے مالی حسسالت ایسسے ہیسسں کسہ وہ‬
‫اتنی بڑی رقم کے ڈوبنے کو افورڈ نہیں کر سکتا‪ ،‬تو اس کے پسساس اس ک سے سسسوا اور‬
‫کوئی چارہ نہیں ہے کہ وہ غلم کی خدمات کو دوسرے شخص کو منتقل کر دے۔‬
‫یہاں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کسہ اگسسر غلم کسسو نئے مالسسک کسسی شخصسسیت اور عسسادات‬
‫پسند نہ ہو تو وہ کیا کرے؟ اس مسئلے کا حل دین اسلم نے یہ پیش کیا ہے کہ وہ اپنی‬
‫خدمات کی منتقلی کے اگلے روز بھی اپنے مالک سے مکاتبت کر کے اس سے فوری‬
‫نجات حاصل کر سکتا ہے۔ مکاتبت کرتے ہی وہ اپنے مالک کی سروس کا پابند نہ رہتا‬
‫بلکہ آزادانہ طور پر رقم کما کر اپنے مالک کو آسان قسطوں میسسں ادائیگسسی کسسر ک سے‬
‫‪106‬‬

‫اپنی آزادی خرید سکتا تھا۔ اس کے باوجود بسا اوقات ی سہ س سہولت ب ھی دی گئی ک سہ‬
‫اگر کسی غلم کو اپنے مالک کا مزاج پسند نہ ہو تو وہ حکومت سسے درخواسسست کسسر‬
‫کے اپنی خدمات کو کسی اور مالک کی طرف منتقل کروا سکتا تھا۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور خلفاء راشدین کے زمسسانے میسسں غلمسسوں‬
‫کو یہ سہولت بھی میسر تھی کہ اگر ان کا مالک مکاتبت پر تیار نہ ہو تسسو وہ معسساملے‬
‫کو حکمران کی عدالت میں لے جا سکتے تھے اور حکمران بھی ایسے ت ھے جسسن کسے‬
‫ہاں کوئی دربان اور سکیورٹی فورس نہ تھی جو غلم کو آنے سے روکے۔‬
‫اس ضمن میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے تو یہاں تک مثال قائم کر‬
‫دی تھی کہ ایک کنیز بھی آ کر آپ کو بازو سے پکسسڑ کسسر اٹ ھاتی اور اپنسسا مسسسئلہ حسسل‬
‫کرنے کا کہہ سکتی تھی۔ خلفاء راشدین کے معاملے میں بھی یہی صورتحال تھی اور‬
‫وہ ہر نماز کے وقت مسجد میں دستیاب ر ہا کرتسے ت ھے۔ ی ہی معساملہ ان خلفساء کسے‬
‫مقامی گورنروں کا بھی تھا۔‬
‫اس تفصیل کو مدنظر رکھا جائے تو یہ معلوم ہوتا ہے کہ غلموں کی خدمات کی‬
‫منتقلی کا اس سے بہتر اور کوئی حل دستیاب ہی نہ تھا۔‬

‫نیم غلم طبقوں ک ے معاملت میں‬
‫اصلحات‬
‫جیسا کہ ہم بیان کر چکے ہیں کہ عربوں کے ہاں اسلم سے پہلے ک سے زمسسانے س سے ہی‬
‫کچھ نیم غلم طبقے بھی پائے جاتے تھے جن کی حالت غلموں سے کچھ ہی بہتر تھی‬
‫لیکن انہیں بھی نہایت حقیر سمجھا جاتا تھا۔ ان میں مزارعے اور ہاتھ سے کام کرنسے‬
‫والے دیگر افراد شامل تھے۔ نیم غلمی کی یہ صورتیں موجودہ دور میں بھی موجود‬
‫ہیں اور اس پر تفصیلی بحث ہم موجودہ دور میں غلمی سے متعلق باب میں کریں‬
‫گے۔‬
‫انسانیت کی پوری تاریخ میں اگر نیم غلم طبقے کا جسسائزہ لیسسا جسسائے تسسو ان ک سے‬
‫غلم بنائے جانے کی صرف اور صرف ایک ہی وجہ معلوم ہوتی ہے اور وہ ہے غربسست۔‬
‫غربت کے مارے لوگ اپنی بنیادی ضروریات کسسو پسسورا کرنسے کسے لئے قسسرض لینسے پسسر‬
‫مجبور ہوتے ہیں۔ ی ہی قسرض بعسد میسں سسود در سسود کسے بساعث انہیسں غلمسی کسے‬
‫شکنجے میں دھکیل دیتا ہے۔ اسی غربت کے باعث یہ غریسسب کسسارکن ن ہایت ہی غیسسر‬
‫انسانی شرائط پر ملزمت کرنے پر مجبور ہوتے ہیں۔ اسلم سے پہلے کے عرب میسسں‬
‫بھی کم و بیش یہی صورتحال تھی۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس طبقے کے لئے جو اصلحات فرمسسائیں‬
‫انہیں بنیادی طور پر تین حصوں میں تقسیم کیا جا سکتا ہے‪:‬‬
‫• غربت کا خاتمہ اور نیم غلم طبقے کا معاشی استحکام‬
‫• ملزمت میں استحصالی شرائط لگانے کا خاتمہ‬
‫• نیم غلم طبقے کے سماجی مرتبے )‪ (Social Status‬کی بحالی‬
‫غربت کے خاتمے سے متعلسسق جسسو اقسسدامات کئے گئے ان میسسں س سے بعسسض وقسستی اور‬
‫بعض دائمی نوعیت کے تھے۔ ان اقدامات اور ان کے اثرات پر پوری ایک کتاب لکھی‬
‫جا سکتی ہے۔ چونکہ یہ تمام اقدامات معروف و مشہور ہیں اس لئے ی ہاں پسسر ہم ان‬
‫اقدامات کی تفصیل بیان کئے بغیر ان کا محض اجمالی جائزہ پیش کریں گے۔‬
‫‪107‬‬

‫غربت کا خاتم ہ اور نیم غلم طبق ے کا معاشی‬
‫استحکام‬
‫• دین اسلم میں زکوۃ کا نظام ہمیشہ سے قائم ہے۔ سیدنا موسی علیہ الصسسلوۃ‬
‫والسلم کی شریعت میں بھی زکوۃ کا تصور موجود ہے۔ زکسسوۃ اس کسسم س سے‬
‫کم رقم کو کہا جاتا ہے جو ہر صاحب ثروت کو غربسست کسے خسساتمے کسے لئے ادا‬
‫کرنا ضروری ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ک سے زمسسانے میسسں دولسست‬
‫کی جو صورتیں موجود تھیں‪ ،‬ان میں آپ نے نے جمع شدہ امسسوال پسسر ‪،%2.5‬‬
‫زرعی پیداوار پر ‪ ،%10-5‬معدنی پیداوار اور دفن شدہ خزانوں کسسی دریسسافت‬
‫پر ‪ %20‬اور جانوروں پر ان کی تعداد‪ ،‬عمر اور نوعیت کے اعتبار س سے زکسسوۃ‬
‫عائد فرمائی۔ اس زکوۃ کا بنیادی مصرف غربت کا خاتمہ ہی تھا۔‬
‫• صاحب ثروت افراد کو بھرپور ترغیب دلئی گئی کہ وہ زکوۃ تک ہی محدود نہ‬
‫رہیں بلکہ اس سے آگے بڑھ کر زیادہ سے زیادہ رقم حتی کہ اپنی ضرورت سسسے‬
‫زائد پورے کے پورے مال کو اپنی خوشی سے اللہ کی راہ میں خسسرچ کریسسں۔ ی سہ‬
‫محض ایک اپیل ہی نہ تھی۔ رسول اللہ صلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے صسسحابہ‬
‫کرام رضی اللہ عنہم میں ایسا زبردست جذبہ پیدا کر دیا ت ھا کسہ وہ اپنسے مسسال‬
‫کو زیادہ سے زیادہ اللہ کی راہ میں غربت کے خاتمے کے لئے خسسرچ کریسسں۔ اگسسر‬
‫حدیث اور تاریخ کے ذخیرے کا جائزہ لیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کسہ اس طریقسے‬
‫سے خرچ کی جانے والی رقم زکوۃ کی رقم سے کہیں زیادہ تھی۔‬
‫• ہجرت کے بعد جسسب صسسحابہ کسسرام رضسسی اللسہ عنہہہم مسسدینہ پہنچسے تسسو ان کسسی‬
‫اکثریت کی مالی حالت بہت خراب تھی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم‬
‫نے ایک ایک انصاری کو ایک ایک مہاجر کا بھائی بنسسا دیسسا۔ انصسسار کسسا ایثسسار اس‬
‫درجے کا تھا کہ انہوں نسے اپنسسی آد ھی جائیسسداد اپنسے م ہاجر ب ھائی کسسو دے دی۔‬
‫مہاجرین نے بھی یہ جائیداد لینے کی بجائے خود کام کر ک سے کمسسانے کسسو ترجیسسح‬
‫دی۔ مہاجرین اور انصار کے درمیان یہ طے پایا کہ مہاجر انصاریوں کے کھیتسسوں‬
‫اور باغات میں پارٹنرشپ پر کام کریں گے اور پیسسداوار کسسو آپسسس میسسں برابسسر‬
‫تقسیم کر لیا جائے گا۔ )بخاری‪ ،‬کتاب المزارعۃ‪ ،‬حدیث ‪(2325‬‬
‫• ایسے صحابہ جنہیں مواخات کے اس عمل میں شریک نہ کیا جا سسسکا ت ھا‪ ،‬ان‬
‫کے لئے مسجد نبوی میں صفہ نامی چبوترہ بنا کر عارضسسی طسسور پسسر آبسساد کیسسا‬
‫گیا۔ ان لوگوں کی ضروریات کا خیال رکھنا مدینہ کی پوری آبادی کے ذمہ تھا۔‬
‫ہر شخص کے پاس جو چیز بھی ضرورت سے زائد ہوتی وہ ان لوگسسوں کسسو دے‬
‫دیتا۔ تھوڑے ہی عرصے میں یہ لوگ بھی مالی طور پر خود کفیل ہو گئے۔‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے قابل کاشت زمین کی آباد کسساری پسسر‬
‫بھرپور توجہ دی۔ آپ نے زمین کاشت کرنے اور انسانوں اور جانوروں کسسے لئے‬
‫غلہ اگانے کو بہت بڑی نیکی قرار دیا۔ )بخاری‪ ،‬کتاب المزارعۃ‪ ،‬حدیث ‪(2320‬‬
‫• سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے یہاں تک حکم دیا کہ جن لوگوں ک سے پسساس فسسالتو‬
‫زمین ہے اور وہ تیسسن سسسال سسے اسسے کاشسست نہیسسں کسسر سسسکے‪ ،‬اسسے اپنسے ان‬
‫بھائیوں کو کاشت کے لئے دے دیں جن کے پاس زمین نہیں ہے۔ )کتاب الخراج(‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ایسی زمینیں جو کسی کسسی ملکیسست‬
‫نہ تھیں‪ ،‬آباد کرنے کے لئے ان لوگوں کو دیسسں جسن کسے پساس زمیسسن موجسسود نسہ‬
‫تھی۔ )بخاری‪ ،‬کتاب المزارعۃ‪ ،‬حدیث ‪ (2335‬ان میں سے جو لوگ زمیسسن کسسو‬
‫آباد نہ کر سکے‪ ،‬سسیدنا عمسر رضسی اللسہ عنسہ کسے دور میسں ان سسے غیسسر آبساد‬
‫‪108‬‬

‫زمینوں کو واپس لے کر ان لوگوں کو دیا گیا جو انہیسسں آبسساد کسسر سسسکتے ت ھے۔‬
‫)کتاب الخراج(‬
‫• بعد کے دور میں سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے زمسسانے میسسں صسسحابہ کسسرام کسے‬
‫اجماع سے یہ فیصلہ کیا گیا کہ مفتوحہ ممالک کی زمینوں کو سرکاری ملکیسست‬
‫میں رکھا جائے گا اور ان کی آمدنی کو غربسست کسے خسساتمے کسے لئے خسسرچ کیسسا‬
‫جائے گا۔ )بخاری‪ ،‬کتاب المزارعۃ‪ ،‬حدیث ‪(2334‬‬
‫اسلم کے قانون وراثت نے چند ہاتھوں میں دولت ک سے ارتکسساز کسسو عمل ً نسساممکن بنسسا‬
‫دیا۔ کوئی شخص خواہ کتنا ہی امیر کیوں نسہ ہوتسسا‪ ،‬اگسسر وہ اور اس کسسی اولد کسسام نسہ‬
‫کرتے تو محض دو نسلوں ہی میں اس کا خاندان م سڈل کلس میسسں آ جاتسسا۔ اس ک سے‬
‫نتیجے میں معاشرے کے بالئی طبقے میں جو خل پیدا ہوتا‪ ،‬اس کے نتیجے میں غریب‬
‫اور مڈل کلس کے افراد کے لئے مسلسل معاشسسی اور معاشسسرتی مواقسسع پیسسدا ہوتے‬
‫رہتے تھے جن کے ذریعے وہ اپنے مالی حالت اور سماجی رتبے کو بہتر بنا سکتے۔ اس‬
‫پر مغربی مصنف ڈینیل پائپس نے نہایت خوبصورت تبصرہ کیا ہے‪:‬‬
‫‪No matter how rich the grandfather, two generations later his grandchildren usually‬‬
‫‪received modest inheritances. Unable to concentrate their resources, great families did not‬‬
‫‪often gain a hold on important positions. Islamicate society knew no rigid social‬‬
‫‪boundaries but was a constant flux of persons and families; as a result, there was always‬‬
‫)‪room for new blood. Only in religious officialdom, where special skills (not money‬‬
‫‪formed the basis of power, does one find consistent hereditary patterns. Because no‬‬
‫‪hereditary aristocracy dominated military and political offices, they were open to social‬‬
‫‪climbers--including slaves.‬‬
‫‪Beyond keeping the positions open, this fluidity in social rank cut down on birthrights.‬‬
‫‪The daintiness of born aristocrats in Hindu India or feudal Europe derived in large part‬‬
‫‪from their assured superiority. They never allowed their ranks to be filled by persons of‬‬
‫‪slave origins; but in Islamicate society, social fortunes were too transient for a person’s‬‬
‫‪birth to play too much of a role in his career. (Daniel Pipes, Slavery Soldiers & Islam,‬‬
‫) ‪www.danielpipes.com‬‬
‫قطع نظر اس کے کہ دادا کتنا ہی امیر کیوں نہ ہو‪ ،‬دو نسلوں کسے بعسسد اس کسے پسسوتے پوتیسساں‬
‫وراثت میں بس معقول حصہ ہی لے رہے ہوتے تھے۔ اپنے وسائل کو )چند ہاتھوں میں( مرکسسوز‬
‫نہ رکھ سکنے کے سبب اعلی خاندان اکثر اوقات ا ہم ع ہدوں پسسر قبضسہ برقسسرار رکھنسے میسسں‬
‫ناکام رہتے تھے۔ مسلم معاشروں میں کوئی سخت سماجی حد بندی نہ تھی بلک سہ افسسراد اور‬
‫خاندانوں کے )سماجی رتبے میں( حرکت ہوتی رہتی تھی۔ اس کا نتیجہ یہ نکلتا کہ ہمیشسسہ نئے‬
‫خون کے لئے جگہ موجود رہا کرتی تھی۔‬
‫صرف بعض مذہبی عہدوں پر‪ ،‬جہاں پیسے کی بجائے مخصوص صلحیتیں ہی طاقت کا منبع‬
‫تھیں‪ ،‬کسی کو موروثی اقتدار نظر آ سکتا ہے )اگرچہ ابتسسدائی صسسدیوں میسسں ی سہ بسسات بالکسسل‬
‫غلط ہے(۔ چونکہ فوجی اور سیاسی عہدوں کے لئے کوئی موروثی صسسلحیت درکسسار ن سہ ت ھی‪،‬‬
‫اس وجہ سے غلموں سمیت ترقی کے خواہشمند ہر طبقے کے لئے راستہ کھل تھا۔‬
‫اس سماجی بہاؤ کی وجسہ سسے ع ہدے حاصسسل کرنسے کسسا راسسستہ کھل رکھنسے کسے سسساتھ سسساتھ‬
‫پیدائشی حقوق میں بھی کمی واقع ہو چکی تھی۔ ہندو انڈیا یا فیسسوڈل یسسورپ میسسں مراعسسات‬
‫یافتہ طبقے کے افراد پیدائش کے ساتھ ہی بہتر سماجی مرتبسہ حاصسسل کسسر لیسسا کرتسے ت ھے اور‬
‫انہوں نے کبھی اپنے عہدوں کو سابقہ غلموں کے حوالے کرنے اجازت نہ دی تھی‪ ،‬مگر مسسسلم‬
‫معاشرے میں کسی شخص کی محض پیدائش کو اس کی قسمت بنانے میں بہت کم دخسسل‬
‫حاصل تھا۔‬

‫‪109‬‬

‫ملزمت میں استحصالی شرائط کا خاتم ہ‬
‫• مزارعوں کے ساتھ زیادتی کی ایک صورت یہ بھی ت ھی کسہ مالسسک زمیسسن کسے‬
‫اس حصے کی پیداوار کو‪ ،‬جو پانی کے قریب ہوتا‪ ،‬اپنے لئے مخصوص کر لیتسسا۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس استحصالی شرط سے منسسع فرمسسا‬
‫دیا۔ اس حدیث کو روایت کرنے والے سیدنا رافع بن خدیج رضی اللسہ عنسہ ہیسسں‬
‫جو خود زمیندار تھے اور اس طریقے سے زمین کاشت کے لئے دیا کرتے ت ھے۔‬
‫اس کے بعد وہ اتنے محتسساط ہوئے کسہ مزارعسست سسے ہی اجتنسساب کرنسے لگسے۔‬
‫)بخاری‪ ،‬کتاب المزارعۃ‪ ،‬حدیث ‪(2327‬‬
‫• رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے بالئی علقسسوں ک سے زمیسسن داروں کسسو‬
‫حکم دیا کہ وہ اپنی زمینوں کو سیراب کرنے کے بعد پانی کو نشیبی علقوں کسسی‬
‫زمینوں کسے لئے چ ھوڑ دیسسں تساکہ پیسسداوار میسسں اضسسافہ ہو سسسکے۔ )بخسساری‪ ،‬کتساب‬
‫المساقاۃ‪ ،‬حدیث ‪(2369‬‬
‫• حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے محنت کر کے کمانے کسسی بھرپسسور ترغیسسب‬
‫دی۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬اگر کوئی شخص رسی لے کر لکڑیوں کا گٹھا لئے اور اسے‬
‫بیچے تو یہ اس سے بہتر ہے کہ وہ لوگوں کے سسامنے ہاتھ پھیلئے۔" )بخساری‪ ،‬کتساب‬
‫المساقاۃ‪ ،‬حدیث ‪(2373‬‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے چراگاہوں کو مخصوص کر ک سے اس سے‬
‫عام لوگوں کے مویشیوں کسے لئے بنسسد کسسر دینسے سسے منسسع فرمسسا دیسسا۔ اس کسسا‬
‫مقصد یہی تھا کہ سب لوگوں کے مویشیوں کو خوراک میسر ہو سسسکے اور ان‬
‫کی مالی حالت میں بہتری آ سکے۔ )بخاری‪ ،‬کتاب المساقاۃ‪ ،‬حدیث ‪(2370‬‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غرباء و مساکین کسے لئے یسہ طسے کسسر‬
‫دیا کہ اگر وہ کوئی قرض چھوڑ کر فوت ہوں گے تو ان کے قرض کی ادائیگسسی‬
‫ان کے وارثوں کی نہیں بلکہ حکومت کسسی ذم سہ داری ہو گسسی۔ )مسسسلم‪ ،‬کتسساب‬
‫الفرائض‪ ،‬حدیث ‪(4157‬‬
‫نیم غلم طبقے کی سماجی رتبے )‪ (Social Status‬کی بحالی سے متعلق رسول الل سہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے اقدامات کی تفصیل ہم آزاد کردہ غلموں ک سے سسسماجی‬
‫مرتبے سے متعلق اصلحات کے عنوان میں بیان کر رہے ہیں۔‬

‫سابق ہ غلموں اور نیم غلموں ک ے‬
‫سماجی رتب ے )‪ (Social Status‬میں اضاف ہ‬
‫ولء ک ے ادار ے کا استحکام‬
‫جیسا کہ ہم تفصیل سے بیان کر چکے ہیں کہ اسلم س سے پہل سے ک سے زمسسانے میسسں ب ھی‬
‫عرب میں نیک لوگ موجود تھے جو غلموں کو آزاد کرنے کو نیکی تصور کرتے ت ھے۔‬
‫عربوں کے ہاں آزاد کردہ غلموں کے لئے ایک سماجی ادارہ موجود ت ھا جس سے "ولء"‬
‫کہا جاتا تھا۔ ولء بنیادی طور پر کسی شخص کو عرب معاشرے میں رہن سے کسسا حسسق‬
‫دیتی تھی۔ عسسرب اپنسے درمیسسان غیسسر قسسوم کسے فسسرد کسسو صسسرف اسسسی صسسورت میسسں‬
‫برداشت کیا کرتے تھے جب وہ کسی عرب کی پناہ حاصل کر لے۔ ولء کے اس رشتے‬
‫کے نتیجے میں غیر عرب کو عرب معاشرے میں رہنے کا حق مل جاتا۔ ایسے لوگسسوں‬
‫کو "مولی" جمع "موالی" کہا جاتا تھا۔‬
‫‪110‬‬

‫یہ موالی آزاد کردہ غلم بھی ہوا کرتے تھے اور دیگر غریب لوگ ب ھی۔ ی سہ مسسوالی‬
‫مجموعی طور پر نیم غلمی کی زندگی بسر کیا کرت سے ت ھے۔ ان کسسا سسسماجی درجسہ‬
‫بہت پست سمجھا جاتا تھا اور ان سے کوئی اپنی بہن یا بیٹی کا رشتہ بھی کرنسے کسو‬
‫تیار نہ ہوا کرتا تھا۔‬
‫قرآن مجید نے آغاز وحی کے زمانے میں ہی یہ واضسسح کسسر دیسسا ت ھا کسہ اللسہ تعسسالی‬
‫اسلم قبول کرنے والے امیر لوگوں سے یہ مطالبہ کرتا ہے کہ وہ اپنے غلموں اور دیگر‬
‫غرباء کا درجہ خود تک بلند کریں۔‬
‫ضك ُ ْ َ‬
‫ض َ‬
‫مسسا‬
‫ما ال ّ ِ‬
‫ن فُ ّ‬
‫ل ب َعْ َ‬
‫ه فَ ّ‬
‫م ع َل َسسى َ‬
‫ض سُلوا ب ِسَراّدي رِْزقِهِ س ْ‬
‫ق فَ َ‬
‫َوالل ّ ُ‬
‫ذي َ‬
‫ض َِفي الّرْز ِ‬
‫م ع َلى ب َعْ ٍ‬
‫َ‬
‫ن ۔ )النحل ‪(16:71‬‬
‫دو َ‬
‫ح ُ‬
‫ج َ‬
‫مةِ الل ّهِ ي َ ْ‬
‫م ِفيهِ َ‬
‫واٌء أفَب ِن ِعْ َ‬
‫م فَهُ ْ‬
‫مان ُهُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َ ْ‬
‫َ‬
‫س َ‬
‫اللہ نے تم میں سے بعض کو دیگر پر رزق کے معاملے میں بہتر بنایا ہے۔ تو ایسسسا کیسسوں نہیسسں‬
‫ہے کہ جو رزق کے معاملے میں فوقیت رکھتے ہیں وہ اسے غلموں کو منتقل کسسر دیسسں تسساکہ وہ‬
‫ان کےبرابر آ سکیں۔ تو کیا اللہ کا احسان ماننے سے ان لوگوں کو انکار ہے؟‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جہاں پہلے سے موجود غلموں کسسو آزاد کرن سے‬
‫اور ان کی حالت بہتر بنانے کے اقدامات کئے وہاں آپ نے آزاد کردہ غلمسسوں اور نیسسم‬
‫غلموں کے سماجی رتبے کو بہتر بنانے کے لئے بھی عملی اقسسدامات کئے۔ سسسب س سے‬
‫پہلے آپ نے مولی کا درجہ اس کی قوم کے برابر قرار دیا۔‬
‫حدثنا آدم‪ :‬حدثنا شعبة‪ :‬حدثنا معاوية بن قّرة وقتادة‪ ،‬عن أنس بن مالسسك رضسسي اللسسه‬
‫عنه‪ ،‬عن النبي صلى الله عليه وسسسلم قسال‪) :‬مسسولى القسسوم أنفسسهم(‪ .‬أو كمسسا قسال‪.‬‬
‫)بخاری‪ ،‬کتاب المواريث‪ ،‬حديث ‪(6761‬‬
‫سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪،‬‬
‫"کسی قوم کا مولی بھی انہی میں سے ہے۔"‬

‫ولء کے اس تعلق کے نتیجے میں اس بات کا امکان کئی گنا بڑھ گیا کہ سابقہ غلم نہ‬
‫صرف مسلم معاشرے کا حصہ بن جسسائے بلکسہ اسسے معاشسسرے میسسں اعلسسی مقسسام اور‬
‫مرتبہ حاصل ہو سکے۔ اس بارے میں ڈینیل پائپس لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪Slaves owned by a Muslim remained by their master long after emancipation, providing‬‬
‫‪him with allegiance and service in return for protection and patronage. Few slaves‬‬
‫‪returned to their countries of origin after becoming free; the majority stood by their patron.‬‬
‫‪This continuing voluntary relationship increased the likelihood of men of slave origins‬‬
‫‪serving their masters in important positions.‬‬
‫) ‪(Daniel Pipes, Slavery Soldiers & Islam, www.danielpipes.com‬‬
‫آزادی کے بعد طویل عرصے تک کسسسی مسسسلمان ک سے سسسابقہ غلم اس کسے سسساتھ ہی رہت سے۔‬
‫تحفظ اور سرپرستی کے بدلے یہ آزاد کردہ غلم ان کے ساتھ وفسساداری اور خسسدمت کسسا تعلسسق‬
‫قائم رکھتے۔ بہت کم ہی ایسے غلم ہوں گے جو آزاد ہونے کسے بعسد اپنسے اصسل ملکسوں میسں‬
‫واپس گئے ہوں۔ اکثریت اپنے سابقہ مالک کے ساتھ ہی رہا کرتی تھی۔ رضسسا کسسارانہ تعلسسق کسے‬
‫اس سلسلے نے اس بات کا امکان بڑھا دیا کہ اصل ً غلمی سے تعلق رکھن سے وال کسسوئی ب ھی‬
‫شخص اپنے سابقہ آقاؤں کے ہاں اہم عہدے حاصل کر سکے۔‬

‫ولء کے اس تعلق کے نسستیجے میسسں آزاد کسسردہ غلم کسسو اپن سے سسسابقہ مالسسک کسے برابسسر‬
‫سماجی رتبہ مل جایا کرتا تھا۔ یہ لوگ عام طور پر اپنے سابقہ مالکوں کے سسساتھ ہی‬
‫رہا کرتے اور ان کے ہاں تنخواہ کے بسسدلے ملزمسست کسسر لیسسا کرتسے ت ھے۔ اس تعلسسق کسسا‬
‫سابقہ مالک کو فائدہ یہ پہنچتا تھا کہ اسے ایک قابل اعتماد ساتھی میسر آ جایسسا کرتسسا‬
‫تھا۔ جب یہ غلم فوت ہوتا تو اس کی وراثت کو اس کے ورثا میں قسسرآن ک سے قسسانون‬
‫کے تحت تقسیم کرنے کے بعد جو رقم باقی بچتی‪ ،‬اسے اس کے سابقہ مالک کسسو دے‬
‫‪111‬‬

‫دیا جاتا۔ اس طریقے سے اس مالک کو اپنی وہ انوسٹمنٹ واپس مل جاتی جسسو اس‬
‫نے غلم کو خریدنے‪ ،‬اس کی تربیت کرنے اور پھر اسے آزاد کرنے پر کی ہوتی تھی۔‬
‫ایسے غلم جو غیر عرب ممالک سے تعلق رکھتے تھے‪ ،‬ان کی ولء کا رشسستہ اس‬
‫شخص سے قائم کر دیا جاتا جس کے ہاتھ پسسر ان ہوں ن سے اسسسلم قبسسول کیسسا ت ھا۔ اس‬
‫طریقے سے ان غلموں کو بھی مسلم معاشرے میں ایک باوقار مقام حاصل ہو جایا‬
‫کرتا تھا۔‬
‫ولء کے اسی رشتے کے باعث مسسسلمانوں کسسی تاریسسخ میسسں ب ہت سسے افسسراد اور‬
‫قبائل کو غیر معمولی اثر و رسوخ حاصل ہوا۔ اس کی تفصیل بیان کرتے ہوئے ابسسن‬
‫خلدون لکھتے ہیں‪:‬‬
‫قال صلى الله عليه وسلم‪ " :‬مولى القوم منهم " ‪ ،‬وسواء كسسان مسسولى رق أو مسسولى‬
‫اصطناع وحلف‪ ،‬وليس نسب ولدته بنافع له في تلك العصبية۔۔۔۔۔۔۔وهذا شسسأن المسسوالي‬
‫في الدول والخدمة كلهم‪ ،‬فإنهم إنما يشسسرفون بالرسسسوخ فسسي ولء الدولسسة وخسسدمتها‪،‬‬
‫وتعدد الباء في وليتها‪ .‬أل ترى إلى موالي التراك في دولة بني العباس‪ ،‬وإلسسى بنسسي‬
‫برمك من قبلهم‪ ،‬وبني نوبخت كيف أدركسسوا السسبيت والشسسرف وبنسسوا المجسسد والصسسالة‬
‫بالرسوخ في ولء الدولة‪ .‬فكان جعفر بن يحيى بن خالد من أعظم الناس بيتا ً وشرفا ً‬
‫بالنتساب إلى ولء الرشيد وقومه‪ ،‬ل بالنتساب في الفرس‪ .‬وكذا مسسوالي كسسل دولسسة‬
‫وخدمها إنما يكون لهم البيت والحسب بالرسوخ في ولئها والصالة فسسي اصسسطناعها‪.‬‬
‫)ابن خلدون؛ مقدمة؛ باب ‪ 2‬فصل ‪(14‬‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬کسی قوم کا آزاد کردہ غلم انہی میسسں سسے‬
‫ہے۔" اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ وہ شخص غلمی سے آزاد ہونے کے باعث مولی بنسسا ہہہو‬
‫یا حلف یا محبت کے تعلق سے۔ اس قسم کی عصبیت میں نسلی خاندان کی کوئی اہمیسست‬
‫نہیں ہوا کرتی۔۔۔۔۔یہ سلطنتوں میں موالی اور ان کی خدمات کا معاملہ ہے۔ انہیسسں حکمسسران‬
‫کی ولء حاصل کرنے اور اسے اپنی خدمات پیش کرنے کے ذریعسے غیسر معمسولی شسرف اور‬
‫رسوخ حاصل ہوا۔ کیا آپ بنو عباس کے عہد میں آزاد کردہ ترک غلموں کو نہیں دیکھتے؟ ان‬
‫سے پہلے یہی معاملہ بنو برمکہ کا ہے۔ اسی طرح بنو نوبخت نے کسسس طسسرح مقسسام اور مرتب سہ‬
‫حاصل کیا۔ ان دونوں کو حکمران کی ولء کے ذریعے اس دور میں عزت و مقسسام اور اثسسر و‬
‫رسوخ حاصل ہوا۔‬

‫اگر مسلم دنیا میں ولء کے اس تعلق کے نتسسائج کسسا تقابسسل موجسسودہ دور کسے مغربسسی‬
‫معاشروں سے کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ اس تعلسسق ک سے نسستیجے میسسں سسسابقہ غلم‬
‫کس طریقے سے مسسسلم معاشسسرے میسسں اعلسسی مقسسام حاصسسل کرت سے چلسے گئے جبکسہ‬
‫مغربی معاشروں میں غلمی کے خاتمے کے ڈیڑھ سو برس بعد بھی یہ مسئلہ آج تسسک‬
‫برقسسرار ہے۔ امتیسساز کسے خلف ب ہت سسے قسسوانین )‪ (Anti-Discrimination Laws‬کسسی‬
‫موجودگی میں بھی امریکی معاشرے میں آج بھی ووٹ رنگ اور نسل دیکھ کر دیسسے‬
‫جاتے ہیں۔‬

‫سابق ہ غلموں س ے صحابیات کی شادی ک ے اقدامات‬
‫موالی کا درجہ بلند کرنے کے لئے آپ نے اپنے خاندان سے مثال قائم فرمائی۔ آپ نسسے‬
‫اپنے آزاد کردہ غلم سیدنا زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کا نکاح اپنی کزن سسسیدہ زینسسب‬
‫بنت جحش رضی اللہ عنہا سے کیا۔ یہ خاتون قریش کے خاندان بنو ہاشم س سے تعلسسق‬
‫رکھتی تھیں۔ یہ بات مشہور و معروف ہے کہ عربوں میں قریش کو سب سے افضسسل‬
‫سمجھا جاتا تھا اور قریش میں بنو ہاشم کا درجہ خصوصی سمجھا جاتا ت ھا۔ اگرچ سہ‬
‫یہ شادی زیادہ عرصہ نہ چل سکی لیکن بہرحال یہ مثال قائم ہو گئی کہ مولی کا درجہ‬
‫اس کی قوم کے برابر ہے۔ اس کے بعد صحابہ کرام میں نہ صرف آزاد کسسردہ غلمسسوں‬
‫بلکہ موجودہ غلموں سے بھی اپنی لڑکیوں کی شادی کا سلسلہ شروع ہو گیا۔‬
‫‪112‬‬

‫حدثنا أبو اليمان‪ :‬أخبرنا شعيب‪ ،‬عسن الزهسري قسسال‪ :‬أخسسبرني عسروة بسسن الزبيسسر‪ ،‬عسسن‬
‫عائشة رضي الله عنها‪ :‬أن أبا حذيفة بن عتبة بن ربيعة بن عبد شمس‪ ،‬وكسسان ممسسن‬
‫شهد بدرا مع النبي صلى الله عليه وسلم‪ ،‬تبنى سالما‪ ،‬وأنكحسه بنست أخيسه هنسد بنست‬
‫الوليد ابن عتبة بن ربيعة‪ ،‬وهو مولى لمرأة من النصار‪).‬بخاری‪ ،‬کتاب النکاح‪ ،‬حديث‬
‫‪(5088‬‬
‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ ابوحذیفہ بن عتبہ بن ربیعہ بن عبدشمس )جو کہ‬
‫قریش کے ایک ممتاز خاندان بنو عبدشمس سے تھے( اور انہوں نے نبی صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم کے ساتھ جنگ بدر میں حصہ لیا تھا‪ ،‬نے سالم کو اپنا منہ بول بیٹا بنا لیا تھا اور ان کسسی‬
‫شادی اپنی بھتیجی ہند بنت ولید بن عتبہ بن ربیعہ سے کسسر دی ت ھی۔ یسہ سسسالم ایسسک انصسساری‬
‫خاتون کے آزاد کردہ غلم تھے۔‬

‫َ‬
‫كاَتبسسا ً َ‬
‫م َ‬
‫ن‬
‫ن نُ َ‬
‫كسسا َ‬
‫ساٍر‪ :‬أ ّ‬
‫ما َ‬
‫مال ِ ٍ‬
‫حد ّث َِني ي َ ْ‬
‫َ‬
‫ن يَ َ‬
‫ن ُ‬
‫فْيعا ً ُ‬
‫سل َي ْ َ‬
‫ن َ‬
‫ن أِبي الّزَناِد‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫حَيى‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن بْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫لُ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ة‪,‬‬
‫ا‬
‫ه‬
‫تس‬
‫ح‬
‫ت‬
‫ت‬
‫ن‬
‫كسا‬
‫هسا‪،‬‬
‫ل‬
‫ا‬
‫سد‬
‫س‬
‫ب‬
‫ع‬
‫و‬
‫أ‬
‫سلم‬
‫س‬
‫وس‬
‫عليسه‬
‫اللسه‬
‫صلى‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ال‬
‫ج‬
‫و‬
‫ز‬
‫ة‬
‫م‬
‫ل‬
‫س‬
‫م‬
‫َ‬
‫حسّر ٌ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫مسَرأة ٌ ُ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ ْ‬
‫ْ‬
‫ّ َ َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ِ ّ‬
‫ْ ِ‬
‫صلى الله عليه وسلم أ َن يأ ْ‬
‫ن‪ ،‬ث ُم أ َراد أ َن يراجعها‪ ،‬فَأ َمره أ َ‬
‫ْ‬
‫ي‬
‫ت‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ال‬
‫ج‬
‫وا‬
‫ز‬
‫ي‬
‫ت‬
‫ن‬
‫ث‬
‫ا‬
‫قَها‬
‫فَط َل ّ َ‬
‫ِ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫عن ْد َ الد َّرج آ ِ ً‬
‫ن ذ َل ِ َ‬
‫ما‪،‬‬
‫ن عَ ّ‬
‫ه ِ‬
‫ن َثاب ِ ٍ‬
‫ك‪ ،‬فَل َ ِ‬
‫فا َ‬
‫ما َ‬
‫ت‪ ،‬فَ َ‬
‫ن‪ ،‬فَي َ ْ‬
‫سسأل َهُ َ‬
‫قي َ ُ‬
‫سأل َ ُ‬
‫ع ُث ْ َ‬
‫ه عَ ْ‬
‫ن بْ َ‬
‫خذا ب ِي َد ِ َزي ْد ِ ب ْ ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ت ع َلي ْسك‪).‬موطسساء مالسسک‪ ،‬کتسساب الطلق‪،‬‬
‫ميعا ف َ‬
‫ج ِ‬
‫ت ع َلي ْسك‪َ ،‬‬
‫قال ‪َ :‬‬
‫َفاب ْت َد ََراه ُ َ‬
‫مس ْ‬
‫حُر َ‬
‫مس ْ‬
‫حُر َ‬
‫حديث ‪(1672‬‬
‫سلیمان بن یسار کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زوج سہ ام سسسلمہ رضسسی‬
‫اللہ عنہا کے ایک غلم یا مکاتب نفیع تھے۔ ان کے نکاح میں ایک آزاد خاتون تھیسسں۔ ان ہوں ن سے‬
‫انہیں دو مرتبہ طلق دے دی اور پھر رجوع کرنے کا ارادہ کیا۔ نبی صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم‬
‫کی ازواج نے معاملے کو سیدنا عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ )جو کہ خلیفہ تھے( کی عسسدالت‬
‫میں لے جانے کا حکم دیا۔ وہ ان سے فیصلہ کروانے کے لئے گئے تو ان کی ملقسسات سسسیڑھیوں‬
‫کے نزدیک ان سے ہوئی۔ اس وقت وہ زید بن ثابت رضی اللہ عنہ کے ساتھ جلدی جلدی کہیسں‬
‫جا رہے تھے۔ ان سے پوچھا تو وہ دونوں کہنے لگے‪" ،‬وہ اب تمہارے لئے حرام ہے‪ ،‬وہ اب تم ہارے‬
‫لئے حرام ہے۔"‬

‫َ‬
‫شست ََرى ع َب ْسسدا ً‬
‫مال ِ ٌ‬
‫وام ِ ا ْ‬
‫ن َرِبيعَ َ‬
‫ن‪:‬أ ّ‬
‫ن أِبي ع َب ْسد ِ الّر ْ‬
‫َ‬
‫ح َ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫ن ال ْعَس ّ‬
‫ن الّزب َي ْسَر ب ْس َ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫مس ِ‬
‫ة بْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ي‪ ،.‬وََقسسا َ‬
‫ه الّزب َي ُْر َقا َ‬
‫ل‬
‫ما أع ْت َ َ‬
‫فَأع ْت َ َ‬
‫حّر ٍ‬
‫ن ِ‬
‫مَرأةٍ ُ‬
‫ه‪ ،‬وَل ِذ َل ِك العَب ْد ِ ب َُنو َ‬
‫م َ‬
‫ل هُ ْ‬
‫ق ُ‬
‫ة‪ ،‬فَل ّ‬
‫نا ْ‬
‫ق ُ‬
‫وال ِ ّ‬
‫مس َ‬
‫م ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م ‪ :‬بَ ْ‬
‫ن‪ ،‬ف َ‬
‫ن عَ ّ‬
‫واِليَنا‪ .‬فا ْ‬
‫مسسا ُ‬
‫ق َ‬
‫فا َ‬
‫ما َ‬
‫ضى ع ُث ْ َ‬
‫موا إ ِلى ع ُث ْ َ‬
‫ص ُ‬
‫م َ‬
‫ل هُ ْ‬
‫مه ِ ْ‬
‫واِلي أ ّ‬
‫َ‬
‫خت َ َ‬
‫م َ‬
‫م َ‬
‫ن ِللّزب َي ْسرِ‬
‫ن بْ ِ‬
‫َ‬
‫م‪) .‬موطاء مالک‪ ،‬کتاب العتق و الولء‪ ،‬حديث ‪(2270‬‬
‫ه‬
‫ئ‬
‫ل‬
‫و‬
‫بِ َ ِ ِ ْ‬
‫ربیعۃ بن ابو عبدالرح ٰمن کہتے ہیں کہ سیدنا زبیر بن عوام رضی اللہ عنہ نے ایک غلم کو خرید‬
‫کر اسے آزاد کر دیا۔ اس غلم کے ایک آزاد بیوی میں سے بچے تھے۔ جب سیدنا زبیسسر رضسسی‬
‫اللہ عنہ نے اسے آزاد کیا تو فرمایا کہ تمہارے بچے بھی میرے مسسوالی ہیسسں۔ اس شسسخص نےک ہا‪،‬‬
‫"نہیں‪ ،‬یہ تو اپنی ماں کے موالی ہوئے۔" وہ یہ مقدمہ لے کر سیدنا عثمان بن عفان رضسسی اللسسہ‬
‫عنہ کی عدالت میں گئے۔ آپ نے ان بچوں کی ولء کا فیصلہ سیدنا زبیسسر رضسسی اللسہ عنسہ کسے‬
‫حق میں کر دیا۔‬

‫انصاری خاتون کے آزاد کردہ غلم سیدنا سالم رضی اللسہ عنسہ کسی شسادی ب ھی ایسسک‬
‫قریشی خاتون سے ہوئی تھی۔ انہی سالم کے بارے میں بیان کیا جاتا ہے کہ‪:‬‬
‫حدثنا إبراهيم بن المنذر قال‪ :‬حدثنا أنس بن عياض‪ ،‬عن عبيد الله‪ ،‬عن نافع‪ ،‬عن ابن‬
‫عمر قال‪ :‬لما قدم المهاجرون الولون العصبة‪ ،‬موضع بقباء‪ ،‬قبل مقدم رسول اللسسه‬
‫صلى الله عليه وسلم‪ ،‬كان يؤمهم سسسالم‪ ،‬مسسولى أبسسي حذيفسسة‪ ،‬وكسسان أكسسثرهم قرآنسسا‪.‬‬
‫)بخاری‪ ،‬کتاب الصلوۃ‪ ،‬حديث ‪(693‬‬
‫سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں‪" ،‬جب م ہاجرین کسسا پہل گسسروہ ہجسسرت کسسر ک سے‬
‫مدینہ میں آیا تو انہوں نے قباء میں قیام کیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم کسسی آمسسد‬
‫سے قبل ابوحذیفہ کے مولی سالم رضی اللہ عنہمسا ہمساری امسامت کیسا کرتسے ت ھے کیسونکہ وہ‬
‫سب سے زیادہ قرآن کے عالم تھے۔‬

‫‪113‬‬

‫موجود ہ اور سابق ہ غلموں کی امامت‬
‫موجودہ دور کے برعکس‪ ،‬اس دور میں نماز کی امامت کرنا کوئی معمولی بسسات ن سہ‬
‫تھی۔ نماز کی امامت‪ ،‬دنیا کی امامت سے متعلق تھی۔ یہی وجہ ہے ک سہ جسسب سسسیدنا‬
‫ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کو خلیفہ بنایا گیسا تسسو یسہ دلیسل پیسسش کسی گئی کسہ چسسونکہ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اپنی زندگی میں انہیں نماز کا امام بنایا ت ھا‪،‬‬
‫اس وجہ سے وہ خلفت کے بھی سب سے زیادہ حقدار ہیں۔ انہی سالم رضی اللہ عنسسہ‬
‫کو سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے اپنے بعد خلیفہ نامزد کرنے کا ارادہ کیا تھا لیکن سالم‬
‫ان سے پہلے ہی وفات پا گئے تھے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اپنے آزاد کردہ غلم زید رضی اللہ عنہ کسسو‬
‫جنگ موتہ میں ایسے لشکر کا سربراہ بنا کر بھیجا جسسس میسسں ان کسے نسسائب آپ کسے‬
‫اپنے کزن سیدنا جعفر طیار رضی اللہ عنہ تھے۔ نائب دوم انصار کے ایک بسسڑے رئیسسس‬
‫عبداللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہ تھے اور سیدنا خالسسد بسسن ولیسسد رضسی اللسہ عنسہ جیسسے‬
‫کمانڈر ان سب حضرات کے ماتحت عام سسسپاہی کسسی حیسسثیت س سے اس لشسسکر میسسں‬
‫شریک تھے۔ جب یہ تینوں قائدین شہید ہوئے تو سیدنا خالد رضی الل سہ عن سہ ن سے کمسسان‬
‫سنبھالی تھی۔ بعد میں آپ نے انہی زید کے بیٹے اسامہ رضی اللہ عنہ کو ایسے لشکر‬
‫کا سربراہ مقرر فرمایا جس میں سیدنا ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما جیسے بسسزرگ‬
‫بھی شامل تھے۔‬
‫حدثنا إسماعيل‪ :‬حدثنا مالك‪ ،‬عن عبد الله بن دينار‪ ،‬عن عبد الله بن عمر رضي اللسسه‬
‫عنهما‪ :‬أن رسول الله صلى الله عليه وسلم بعث بعثا‪ ،‬وأمر عليهسسم أسسسامة بسسن زيسسد‪،‬‬
‫فطعن الناس في إمارته‪ ،‬فقام النبي صلى الله عليه وسسسلم فقسسال‪) :‬إن تطعنسسوا فسسي‬
‫إمارته فقد كنتم تطعنون في إمارة أبيه من قبل‪ ،‬وايم اللسسه إن كسسان لخليفسسا للمسسارة‪،‬‬
‫وإن كان لمن أحب الناس لي‪ ،‬وإن هذا لمن أحب الناس إلي بعده(‪) .‬بخسساری‪ ،‬کتسساب‬
‫الفضائل‪ ،‬حديث ‪(3730‬‬
‫سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں‪ :‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نسسے ایسسک‬
‫لشکر بھیجا اور اس کا امیر اسامہ بن زید رضی اللہ عنہما کو بنا کر بھیجا۔ لوگوں نے ان کے‬
‫امیر ہونے پر اعتراض کیا تو نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کھڑے ہوئے اور فرمایسسا‪" ،‬تسسم لسسوگ‬
‫ان کی امارت پر اعتراض کر رہے ہو جبہ تم نے اس سے پہلے ان کے والد کی امارت پر ب ھی‬
‫اعتراض کیا تھا۔ خدا کی قسم وہ امارت کے سب سے زیادہ اہل تھے۔ وہ مجھے تمسسام لوگسسوں‬
‫میں سب سے زیادہ پسند تھے اور ان کے بعد اسامہ مجھے سب سے زیادہ عزیز ہے۔"‬

‫اسی کو بیان کرتے ہوئے مغربی مورخ ایڈورڈ گبن لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪The holy banner was entrusted to Zeid; and such was the discipline or enthusiasm‬‬
‫‪of the rising sect, that the noblest chiefs served without reluctance under the slave‬‬
‫‪of the prophet. (Edward Gibbon, The History of Decline & Fall of Roman Empire,‬‬
‫) ‪http://www.ccel.org‬‬

‫اس جنگ میں مقدس جھنڈا زید کو دیا گیا تھا۔ اس ابھرتے ہوئے گروہ کے ڈسسسپلن اور جسسوش‬
‫کا یہ عالم تھا کہ )عرب کے( معزز ترین سرداروں نے بغیر کسی جھجک ک سے نسسبی صسسلی الل سہ‬
‫علیہ وسلم کے غلم کے تحت جنگ کی۔‬

‫موجودہ و سابقہ غلموں اور نیم غلموں کا درجسہ اس قسسدر بلنسسد کسسر دیسسا گیسسا ت ھا کسہ‬
‫سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ ایک آزاد کردہ غلم بلل کو اپنا سردار کہا کرتسے‬
‫تھے۔‬
‫حدثنا أبو نعيم‪ :‬حدثنا عبد العزيز بن أبي سلمة‪ ،‬عن محمد بن المنكسسدر‪ :‬أخبرنسسا جسسابر‬
‫بن عبد الله رضي الله عنهما قال‪ :‬كان عمر يقول‪ :‬أبسسو بكسسر سسسيدنا‪ ،‬وأعتسسق سسسيدنا‪.‬‬
‫يعني بلل‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب الفضائل‪ ،‬حديث ‪(3754‬‬
‫‪114‬‬

‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کہا کرتے تھے‪" ،‬ابوبکر ہمارے سردار ہیں اور انہوں نے ہمارے سردار‬
‫یعنی بلل کو آزاد کیا تھا۔"‬

‫آج کے دور کی طرح‪ ،‬اس دور کے اہل مکہ کے ہاں خانہ کعبہ میں داخل ہونا ایک ب ہت‬
‫ہی خاص شرف تھا جو صرف رئیسوں اور حکمرانوں کے لئے محدود تھا۔ جسسب مک سہ‬
‫فتح ہوا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے انہی بلل رضسی اللسہ عنسہ کسو کعبسہ‬
‫میں داخل ہو کر تو کیا‪ ،‬اس کی چھت پر چڑھ کر اذان دینسے کسسا حکسسم دیسسا۔ یسہ ایسسسا‬
‫انقلبی قدم تھا جس سے اہل مکہ کے سینے پسسر سسانپ لسسوٹ گئے کسہ ایسک آزاد کسسردہ‬
‫غلم کو کعبہ کی چھت پر چڑھنے کی اجازت دی گئی ہے۔‬

‫سابق ہ غلموں س ے برادران ہ تعلقات‬
‫سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ جن ہوں ن سے ص سہیب اور بلل رضسسی اللسہ عنہمسسا کسسو‬
‫خرید کر آزاد کیا تھا۔ ان کا رویہ اپنے آزاد کردہ غلموں سے کیسا تھا اور رسول اللسسہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے انہیں کیسا رویہ اختیار کرنے کی تعلیم دی تھی‪ ،‬اس کی‬
‫کچھ جھلک اس حدیث میں ملحظہ فرمائیے۔‬
‫حدثنا محمد بن حاتم‪ .‬حدثنا بهز‪ .‬حدثنا حماد بسسن سسسلمة عسسن ثسسابت‪ ،‬عسسن معاويسسة بسسن‬
‫قرة‪ ،‬عن عائذ بن عمرو؛ أن أبا سفيان أتى على سسسلمان و صسسهيب وبلل فسسي نفسسر‪.‬‬
‫فقالوا‪ :‬والله! ما أخذت سيوف الله من عنق عدو الله مأخذها‪ .‬قسسال فقسسال أبسسو بكسسر‪:‬‬
‫أتقولون هذا لشيخ قريش وسيدهم؟‪ .‬فسسأتى النسسبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم فسسأخبره‪.‬‬
‫فقال "يا أبا بكر! لعلك أغضبتهم‪ .‬لئن كنت أغضبتهم لقد أغضسسبت ربسسك"‪ .‬فأتسساهم أبسسو‬
‫بكر فقال‪ :‬يا إخوتاه! أغضبتكم؟ قالوا‪ :‬ل‪ .‬يغفسسر اللسسه لسسك‪ .‬يسسا أخسسي!‪) .‬مسسسلم‪ ،‬کتسساب‬
‫الفضائل‪ ،‬حديث ‪(6412‬‬
‫عائذ بن عمرو رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ )قریش کے سردار( ابوسفیان رضی اللہ عنہ‬
‫)اسلم قبول کرنے سے کچھ دیر پہلے( سلمان‪ ،‬صہیب‪ ،‬بلل اور ایک گروہ رضی اللہ عنہم کسے‬
‫پاس آئے۔ انہوں نے کہا‪" ،‬اللہ کی تلسسواریں اللسہ کسے دشسسمن کسسی گسسردن پسسر اپنسے مقسسام پسسر نسہ‬
‫پہنچیں۔" سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ نے یہ سنا تو فرمایا‪" ،‬کیا تم یہ بات قریش کے بزرگ اور‬
‫سردار کے بارے میں کہہ رہے ہو؟"‬
‫جب نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم تشریف لئے تو انہیں یسہ بسسات بتسسائی گئی۔ آپ نسے فرمایسسا‪،‬‬
‫"ابوبکر! شاید تم نے انہیں ناراض کر دیا۔ اگر تم نے انہیں ناراض کیا تو گویا تم نے اپنسسے رب‬
‫کو ناراض کیا ہے۔" سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ ان کے پاس آئے اور کہنے لگے‪" ،‬میسسرے ب ھائیو!‬
‫کیا میں نے تمہیں ناراض کر دیا ہے۔" وہ بولے‪" ،‬ارے نہیں ہمارے ب ھائی! اللسہ آپ کسی مغفسرت‬
‫فرمائے۔"‬

‫سابق ہ غلموں کا معاشی استحکام‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسلم نسہ صسرف آزاد کسردہ غلمسوں سسے شسفقت کسا‬
‫سلوک فرماتے بلکہ آپ ان کے معاشی مقام کو بھی بہتر بنسسانے ک سے لئے کوشسساں ر ہا‬
‫کرتے تھے۔ آپ نے کسی شخص کے مرنے کے بعد اس کے بچ سے ہوئے مسسال میسسں آزاد‬
‫کردہ غلموں کو بھی وارث بنانے کی رسم شروع کی جس ک سے نسستیجے میسسں ان ک سے‬
‫مالی اسٹیٹس میں اضافہ ہوا۔ اسی طرح آپ نے اپنی آزاد کردہ کنیز سسسیدہ ام ایمسسن‬
‫رضی اللہ عنہا کو مدینہ میں پورا ایک باغ تحفتا ً دیا اور ان کی شادی زیسسد بسسن حسسارثہ‬
‫رضی اللہ عنہ کر دی۔ )بخاری‪ ،‬کتاب الھبسہ‪ ،‬حسسدیث ‪ ،2630‬مسسستدرک حسساکم‪ ،‬حسسدیث‬
‫‪(6910‬‬

‫‪115‬‬

‫باب ‪ :9‬لون ڈیوں س ے متعلق‬
‫خصوصی اصلحات‬
‫ہم نے غلموں سے متعلق اوپر جو اصلحات بیان کی ہیں‪ ،‬یہ سب کسسی سسسب مسسرد و‬
‫عورت ہر قسم کے غلم سے متعلق تھیں۔ جہاں ان اصسسلحات ک سے نسستیجے میسسں غلم‬
‫آزاد ہوئے اور ان کا سماجی رتبہ بلند ہوا‪ ،‬وہیں خواتین غلموں یعنی لونڈیوں کا درجہ‬
‫بھی ان کی نسبت بلند ہوا۔ ان اصلحات کے علوہ لونڈیوں کے لئے خصوصی طور پر‬
‫مزید اصلحات بھی کی گئیں۔ ان کی تفصیل میں جانے سے پہلے‪ ،‬ہم زمسسانہ قبسسل از‬
‫اسلم میں لونڈیوں کی صورتحال کا مختصر جائزہ دوبارہ پیش کرتے ہیں۔‬
‫جیسا کہ ہم بیان کر چکے ہیں کہ دور جاہلیت میں غلموں کسسی ایسسک بسسڑی تعسسداد‬
‫لونڈیوں پر بھی مشتمل تھی۔ انہیں زیادہ تر گھر کے کام کاج کے لئے رک ھا جاتسسا۔ آقسسا‬
‫کو لونڈی پر مکمل جنسی حقوق حاصل ہوا کرتے تھے لیکن اگر آقا کسی لونڈی کی‬
‫شادی کر دیتا تو پھر وہ خود اپنے حق سے دستبردار ہو جایا کرتا تھا۔‬
‫بہت سے آقا اپنی لونڈیوں سے عصمت فروشی بھی کروایا کرتے تھے اور ان کی‬
‫آمدنی خود وصول کیا کرتے تھے۔ اس قحبہ گری کا ایک مقصد یہ بھی ہوا کرتا تھا ک سہ‬
‫لونڈیوں کی ناجائز اولد کو غلم بنا لیا جائے۔ ایسی لونڈیوں کسسو جنسسس مخسسالف کسسو‬
‫لبھانے کے لئے مکمل تربیت فراہم کی جسساتی ت ھی۔ عسسرب میسسں باقاعسسدہ قحبسہ خسسانے‬
‫موجود تھے جن میں موجود طوائفیں عام طور پر لونڈیاں ہی ہوا کرتی تھیسسں۔ شسسب‬
‫بسری کے لئے کسی دوست یا مہمان کو لونڈی عطا کر دین سے کسسا رواج ب ھی ان ک سے‬
‫ہاں پایا جاتا تھا۔ ان لونڈیوں کے حالت کی تفصیل نقل کرتے ہوئے سسسید ابسسو العلسسی‬
‫مودودی لکھتے ہیں‪:‬‬
‫اس وقت عرب میں قحبہ گری کی دو صورتیں رائج تھیں۔ ایک خانگی کا پیش سہ اور دوسسسرے‬
‫باقاعدہ چکلہ۔ "خانگی" کسسا پیشسہ کرنسے والسسی آزاد شسسدہ لونسڈیاں ہوتی تھیسسں جسسن کسسا کسسوئی‬
‫سرپرست نہ ہوتا‪ ،‬یا ایسی آزاد عورتیں ہوتی تھیسسں جسسن کسسی پشسست پنسساہی کرنسے وال کسسوئی‬
‫خاندان یا قبیلہ نہ ہوتا۔ یہ کسی گھر میں بیٹھ جاتیں اور کئی کئی مردوں سسے بیسسک وقسست ان‬
‫کا معاہدہ ہوجاتا کہ وہ ان کو مدد خرچ دیں گے اور اپنی حاجت رفع کرتے رہیں گے۔ جسسب بچ سہ‬
‫پیدا ہو جاتا تو وہ عورت ان مردوں میں سے جس کے متعلق کہہ دیتی کہ یسہ بچسہ اس کسسا ہے‪،‬‬
‫اسی کا بچہ تسلیم کر لیا جاتا تھا۔ یسہ گویسسا معاشسرے میسسں ایسک مسسسلم ادارہ ت ھا جسسے ا ہل‬
‫جاہلیت ایک قسم کا "نکاح" سمجھتے تھے۔‬
‫دوسری صورت یعنی کھلی قحبہ گری صرف لونڈیوں کے ذریعے ہوا کرتی تھی۔ ایک تو یہ کسسہ‬
‫لوگ اپنی جوان لونڈیوں پر ایک بھاری رقم عائد کر دیتے کہ ہر مہینے اتنسسا کمسسا کسسر ہمیسسں دیسسا‬
‫کرو‪ ،‬اور وہ بے چاریاں بدکاری کروا کروا کر یہ مطالبہ پورا کیا کرتی تھیں۔ اس ک سے سسسوا ن سہ‬
‫کسی دوسرے ذریعہ سے وہ اتنا کما سکتی تھیں‪ ،‬نہ مالک ہی یسہ سسسمجھتے ت ھے کسہ وہ کسسسی‬
‫پاکیزہ کسب کے ذریعے یہ رقم لیا کرتی ہیں‪ ،‬اور نہ جوان لونڈیوں پر عام مزدوری کی شرح‬
‫سے کئی کئی گنا رقم عائد کرنے کی کوئی دوسری معقول وجہ ہو سکتی تھی۔‬
‫دوسرا طریقہ یہ تھا کہ لوگ اپنی جوان جوان اور خوبصورت لونڈیوں کو کوٹھوں پر بٹھا دیتے‬
‫تھے اور ان کے دروازوں پر جھنڈے لگا دیتے تھے جنہیں دیکھ کر دور سے ہی معلوم ہو جاتا تھا‬
‫کہ "حاجت مند" آدمی کہاں اپنی حاجت رفع کر سکتا ہے۔ یہ عورتیں "تعلیقیات" کہلتی تھیں‬
‫اور ان کے گھر "مواخیر" کے نام سے مشہور تھے۔ بڑے بڑے معزز رئیسین نے اس طسسرح ک سے‬
‫چکلے کھول رکھے تھے۔ خود عبداللہ بن ابی کا مدینے میں ایک باقاعدہ چکلہ موجود تھا جسسس‬
‫میں چھ خوبصورت لونڈیاں رکھی گئی تھیں۔ ان کے ذریعے وہ صرف دولسست ہی نہیسسں کمسساتے‬
‫‪116‬‬

‫تھے بلکہ عرب کے مختلف حصوں سے آنے والے معزز مہمسسانوں کسسی تواضسسع ب ھی ان ہی س سے‬
‫فرمایا کرتے تھے اور ان کی ناجائز اولد سے اپنے خدم و حشم کی فسسوج بڑھایسسا کرت سے ت ھے۔‬
‫)تفہیم القرآن‪ ،‬سورۃ نور ‪(24:33‬‬

‫قحب ہ گری کی ممانعت‬
‫لونڈیوں سے متعلق اللہ تعالی نے جو اصلحات کرنے کے جو احکامات جاری کئے‪ ،‬ان‬
‫میں سب سے اہم حکم یہی تھا کہ لونڈیوں سے عصمت فروشی کروانے کے کاروبسسار‬
‫کو مکمل طور پر بند کر دیا جائے۔‬
‫هسوا فَتيسات ِك ُم ع ََلسى ال ْبَغساِء إ َ‬
‫ن‬
‫صسنا ً ل ِت َب ْت َُغسوا َ‬
‫َول ت ُك ْرِ ُ‬
‫ض ال ْ َ‬
‫ن تَ َ‬
‫ن أَرد ْ َ‬
‫ِ ْ‬
‫ََ‬
‫حَيساةِ السد ّن َْيا وَ َ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫عسَر َ‬
‫ح ّ‬
‫مس ْ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫م‪) .‬النور ‪(24:33‬‬
‫ن غَ ُ‬
‫فوٌر َر ِ‬
‫ه ِ‬
‫ن فَإ ِ ّ‬
‫حي ٌ‬
‫ن الل َ‬
‫ن ب َعْد ِ إ ِكَراه ِهِ ّ‬
‫م ْ‬
‫ي ُك ْرِهّ ّ‬
‫اگر تمہاری لونڈیاں پاکدامنی کی خواہشمند ہوں تو دنیا کا مال و دولت کمانے کسے لئے انہیسسں‬
‫بدکاری پر مجبور نہ کرو۔ اگر کوئی انہیں مجبور کرے گا تو اللہ تعالی اس مجبوری کے باعث‬
‫انہیں بخشنے وال مہربان ہے۔‬

‫اس آیت کی تفسیر میں ابن کثیر روایت بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم کے زمانے میں مدینہ میں مش سہور منسسافق عبسسداللہ بسسن ابسسی ک سے پسساس چسھ‬
‫لونڈیاں تھیں اور وہ ان سے عصمت فروشی کروایا کرتا تھا۔ ان میں سے ایک لونڈی‬
‫معاذہ رضی اللہ عنہا نے اسلم قبول کر لیا اور پیشہ کرنے سے انکار کسر دیسا۔ عبسسداللہ‬
‫بن ابی نے ان پر تشدد کیا۔ انہوں نے آ کر سیدنا ابوبکر صسسدیق رضسسی الل سہ عن سہ س سے‬
‫شکایت کی جو انہیں لے کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم کسسی خسسدمت میسسں‬
‫پہنچ گئے۔ آپ نے حکم جاری کیا کہ اس لونڈی کو ہرگز واپس نہ بھیجا جائے۔ ابن ابسسی‬
‫نے بہت شور مچایا کہ محمد تو ہمسساری لونسڈیاں چھیننسے لسسگ گئے ہیسسں لیکسسن اس کسے‬
‫شور کو کوئی اہمیت نہ دی گئی اور ان خاتون کو آزاد کر دیا گیسسا۔ )تفصسسیل ک سے لئے‬
‫دیکھئے تفسیر ابن ابی حاتم‪ ،‬حدیث ‪(14528‬‬
‫اس حکم سے کسی کو یہ غلط فہمی نہ ہو کہ اگر وہ خسسود بسسدکاری کسسی خسسواہش‬
‫مند ہوں تو انہیں کھلی چھوٹ دے دی جائے۔ اس آیت کا مقصد یہ ت ھا کسہ اگسسر کسسوئی‬
‫اپنی لونڈی کسسو بسسدکاری پسسر مجبسسور کسسرے تسسو اس کسسی دنیسساوی اور اخسسروی سسسزا کسسا‬
‫مستحق ان کا مالک ہی ہو گا۔ اگر لونڈی اپنی مرضسی سسے عصسمت فروشسسی کرنسا‬
‫چاہے تو اس صورت میں ان کے لئے بھی سزا مقرر کی گئی۔ ابتدا میں یہ سزا انہیں‬
‫انہی کے گھروں میں قید کرنے تک محدود تھی۔ یہ سزا صرف لونڈیوں ہی کسے لئے نسہ‬
‫تھی بلکہ آزاد فاحشہ عورتوں کو ان کے آشنا مردوں سمیت سزا دی گئی۔‬
‫ْ‬
‫ن َ‬
‫ست َ ْ‬
‫ح َ‬
‫دوا‬
‫ن ال ْ َ‬
‫ن أ َْرب َعَس ً‬
‫شس َ‬
‫فا ِ‬
‫ة ِ‬
‫ة ِ‬
‫ش سه ِ ُ‬
‫م ف َ سإ ِ ْ‬
‫ش سه ِ ُ‬
‫م َفا ْ‬
‫ن نِ َ‬
‫من ْك ُس ْ‬
‫سسسائ ِك ُ ْ‬
‫دوا ع َل َي ْهِس ّ‬
‫مس ْ‬
‫والل ِّتي ي َأِتي َ‬
‫فََأ َ‬
‫كوهُن في ال ْبيسسوت حتسسى يتوفّسساهُن ال ْمسوت أ َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫ذا‬
‫س‬
‫ل‬
‫وال‬
‫۔‬
‫ل‬
‫بي‬
‫س‬
‫س‬
‫ن‬
‫س‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ه‬
‫س‬
‫ل‬
‫ال‬
‫ل‬
‫س‬
‫ع‬
‫ج‬
‫ي‬
‫و‬
‫س‬
‫م‬
‫ََ‬
‫ُُ ِ َ ّ‬
‫ِ‬
‫ْ ِ‬
‫َ ْ ُ ْ َ ْ َ‬
‫ُ ُ ّ َ ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫يأ ْتيانها منك ُ ّم َفآُذوهما فَإن تابسسا وأ َ َصسل َحا ّ فَأ َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫حيمسا ً۔‬
‫سا‬
‫س‬
‫ك‬
‫ه‬
‫س‬
‫ل‬
‫ال‬
‫ن‬
‫إ‬
‫سا‬
‫س‬
‫م‬
‫ه‬
‫ن‬
‫ع‬
‫سوا‬
‫س‬
‫ض‬
‫ر‬
‫ع‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫وابسا ً َر ِ‬
‫ُ‬
‫ن ت َّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ُ َ ِ ّ‬
‫ِ ُ‬
‫ِ ْ َ َ ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ َِ َِ‬
‫)النساء ‪(16-4:15‬‬

‫تمہاری عورتوں میں جو بدکاری کا ارتکاب کر بیٹھیں‪ ،‬ان پر اپنے لوگوں میں سے چار افراد‬
‫کی گواہی لو۔ اگر وہ گواہی دیں تو ان عورتوں کو گھروں میں بند رکھو ی ہاں تسسک کسہ مسسوت‬
‫ان کا کام تمام کردے یا اللہ ان کے لئے کوئی اور راستہ نکال دے ۔ اور جو دو مسسرد و عسسورت‬
‫تم میں سے بدکاری کریں تو ان کو ایذا دو۔ پھر اگر وہ توبہ کرلیسسں اور نیکوکسسار ہوجسسائیں تسسو‬
‫ان کا پیچھا چھوڑ دو۔ بےشک اللہ توبہ قبول کرنے وال مہربان ہے۔‬

‫اس سزا کو بعد میں ایک حتمی سزا میں تبدیل کر دیا گیا۔‬

‫خذ ْ ُ‬
‫دوا ك ُ ّ‬
‫ه‬
‫جل ْد َةٍ وََل ت َأ ْ ُ‬
‫ما َرأ ْفَ ٌ‬
‫مئ َ َ‬
‫ل َوا ِ‬
‫الّزان ِي َ ُ‬
‫ن الل ّس ِ‬
‫ما ِ‬
‫ة َ‬
‫جل ِ ُ‬
‫ة َوالّزاِني َفا ْ‬
‫كم ب ِهِ َ‬
‫من ْهُ َ‬
‫حد ٍ ّ‬
‫ة ِفي ِدي ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫ِإن ُ‬
‫شسهَد ْ ع َس َ‬
‫خسرِ وَلي َ ْ‬
‫ن۔ )النسسور‬
‫ما طائ ِ َ‬
‫فس ٌ‬
‫ن ِباللهِ َوالي َسوْم ِ ال ِ‬
‫مسؤ ْ ِ‬
‫م ت ُؤ ْ ِ‬
‫مُنو َ‬
‫ن ال ُ‬
‫ة ّ‬
‫ذاب َهُ َ‬
‫كنت ُ ْ‬
‫مِني َ‬
‫مس َ‬
‫‪117‬‬

‫‪(24:2‬‬
‫بدکاری کرنے والی عورت اور بدکاری کرنے وال مرد )جب ان کی بدکاری ثابت ہوجسسائے تسسو(‬
‫دونوں میں سے ہر ایک کو سو درے مارو۔ اور اگر تم اللہ اور روز آخرت پر ایمان رکھت سے ہو‬
‫تو اللہ کے حکم میں تمہیں ان پر ہرگز ترس نہ آئے۔ اور ان کی سزا کے وقت مسلمانوں کی‬
‫ایک جماعت کو بھی موجود ہونا چاہیے۔‬

‫یہ سزا آزاد مرد و خواتین کے لئے تھی۔ لونڈیوں کی ناقص اخلقی تربیت ک سے بسساعث‬
‫انہیں یہ رعایت دی گئی کہ ان کے لئے نصف سزا مقرر کی گئی۔‬
‫فَإَذا أ ُحصن فَإ َ‬
‫ن ال َْعسس َ‬
‫ح َ‬
‫ب‪) .‬قسسرآن‬
‫ن بِ َ‬
‫ص ُ‬
‫فا ِ‬
‫ت ِ‬
‫صَنا ِ‬
‫م ْ‬
‫ْ ِ ّ ِ ْ‬
‫ما ع ََلى ال ْ ُ‬
‫ف َ‬
‫ذا ِ‬
‫ح َ‬
‫ن نِ ْ‬
‫م ْ‬
‫شةٍ فَعَل َي ْهِ ّ‬
‫ن أت َي ْ َ‬
‫ِ‬
‫‪(4:25‬‬
‫جب لونڈیوں کو نکاح میں محفوظ کر دیا جائے اور اس کے بعد بھی وہ بدکاری کی مرتکسسب‬
‫ہوں تو ان کی سزا آزاد خواتین کی نسبت آدھی ہے۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے قحبہ خانوں کے خلف کاروائی کرتے ہوئے یسسہ‬
‫سزائیں نافذ کیں اور اپنے اقتدار کے علقے میں ان قحبہ خانوں کا مکمل خسساتمہ کسسر‬
‫دیا۔‬
‫حدثنا مسلم بن إبراهيم‪ :‬حدثنا شعبة‪ ،‬عن محمد بن جحادة‪ ،‬عن أبي حازم‪ ،‬عن أبسسي‬
‫هريرة رضي الله عنه قال‪ :‬نهى النسسبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم عسسن كسسسب المسساء‪.‬‬
‫)بخاری‪ ،‬کتاب الجارة‪ ،‬حديث ‪(2283‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے لونڈیوں سسسے‬
‫پیشہ کروانے سے منع فرمایا۔‬

‫حدثنا يعقوب بن إبراهيم‪ ،‬ثنا معتمر‪ ،‬عن سسسلم يعنسسي ابسسن أبسسي السسذيال قسسال‪ :‬حسسدثني‬
‫بعض أصحابنا‪ ،‬عن سعيد بن جبير‪ ،‬عن ابن عباس أنه قسسال‪ :‬قسسال رسسسول الل ّسسه صسسلى‬
‫لسلم‪ ،‬من ساعى في الجاهلية فقد لحق بعصبته‪،‬‬
‫الّله عليه وسلم‪" :‬ل مساعاة في ا ِ‬
‫ومن اّدعى ولدا ً من غير رشدةٍ فل يرث ول يورث"‪) .‬ابو داؤد‪ ،‬کتسساب الطلق‪ ،‬حسسديث‬
‫‪(2264‬‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے فرمایسسا‪،‬‬
‫"اسلم میں کوئی قحبہ گری نہیں ہے۔ جس نے جاہلیت میں قحبہ گری کی ہو‪ ،‬اسے اپنی ماں‬
‫کے رشتے داروں سے ملحق کیا جائے گا۔ جس نے کسی بچ سے کسسو غلسسط طسسور پسسر خسسود سسے‬
‫ملحق کیا‪ ،‬نہ تو وہ بچہ اس کا وارث ہو گا اور نہ ہی وہ شخص اس بچے کا وارث۔‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے یہاں تک حکم دیا کہ لون سڈی کسسی کمسسائی ب ھی‬
‫اسی صورت میں قبول کی جائے جب یہ معلوم ہو کہ اس نے اسے حلل طریقے سے‬
‫کمایا ہے۔‬
‫حدثنا هارون بن عبد الّله‪ ،‬ثنا هاشم بن القاسم‪ ،‬ثنا عكرمسسة‪ ،‬حسسدثني طسسارق بسسن عبسسد‬
‫الرحمن القرشي قال‪ :‬جاء رافع بن رفاعة إلى مجلس النصار فقال‪ :‬لقسسد نهانسسا نسسبي‬
‫الّله صلى الّله عليه وسلم اليوم فذكر أشياء‪ ،‬ونهى عسسن كسسسب المسسة إل مسسا عملسست‬
‫بيدها‪ ،‬وقال هكذا بأصابعه نحسسو الخسسبز والغسسزل والنفسسش ‪) .‬ابسسو داؤد‪ ،‬کتسساب الجسسارة‪،‬‬
‫حديث ‪(3426‬‬
‫سیدنا رافع بن رفاعۃ رضی اللہ عنہ نے انصار کی مجلس میں بتایا کہ نبی صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم نے ہمیں ان چیزوں سے منع فرمایا تھا۔ انہوں نے اس میں لونڈی کی کمسسائی کسسا ذکسسر‬
‫بھی کیا سوائے اس کے کہ وہ اپنے ہاتھ سے کام کرے۔ انہوں نے اپنے ہاتھ کے اشارے سے بتایا کہ‬
‫جیسے روٹی پکانا‪ ،‬سوت کاتنا یا روئی دھنکنا۔‬

‫‪118‬‬

‫لون ڈیوں کو رقص و موسیقی ک ے لئ ے‬
‫استعمال کرن ے پر پابندی‬
‫دور جاہلیت میں یہ عام معمول تھا کسہ لونسڈیوں کسسو رقسسص و موسسسیقی کسسی باقاعسسدہ‬
‫تربیت دی جاتی تھی۔ اس کے لئے باقاعدہ محفلیں جما کرتی تھیسسں جسسن میسسں لسسوگ‬
‫ریشمی لباس پہن کر آتے‪ ،‬شراب پیتے‪ ،‬گانا سنتے‪ ،‬رقص دیکھتے‪ ،‬رقم نچھاور کرتسسے‬
‫اور اگلے مرحلے پر انہی لونڈیوں کو اپنی ہوس مٹانے کے لئے استعمال کیا کرتے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ان محفلوں پر مکمل پابندی عسسائد کرت سے‬
‫ہوئے واضح الفاظ میں یہ حکم جاری فرمایا کہ لونڈیوں کو رقسسص اور موسسسیقی کسسی‬
‫تعلیم نہ دی جائے اور ان کی خدمات کی خرید و فروخت کو مکمل طور پر بنسسد کسسر‬
‫دیا جائے۔‬
‫حدثنا قتيبة أخبرنا بكر بن مضر عن عبيد الله بن زحر عن علي بن يزيد عسن القاسسم‬
‫عن أبي أمامة عن رسول اللسسه صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم قسسال ‪ :‬ل تسسبيعوا القينسسات ول‬
‫تشتروهن ول تعلموهن ولخير في تجارة فيهن وثمنهسسن حسسرام فسسي مثسسل هسسذا أنزلسست‬
‫هذه الية } ومن الناس من يشتري لهو الحديث ليضل عسسن سسسبيل اللسسه { إلسسى آخسسر‬
‫الية قال وفي الباب عن عمر بن الخطاب قال أبسسو عيسسسى حسسديث أبسسي أمامسسة إنمسسا‬
‫نعرفه مثل هذا من هذا الوجه وقد تكلم بعض أهل العلم في علسي بسن يزيسد وضسعفه‬
‫وهو شامي۔ قال الشيخ اللباني ‪ :‬حسن۔ )ترمذی‪ ،‬کتاب البيوع‪ ،‬حديث ‪(1282‬‬
‫سیدنا ابو امامہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬رقص و موسیقی کی ماہر لونڈیوں کو نہ تو فروخت کسسرو اور نسہ ہی خریسدو۔ انہیسسں‬
‫اس کی تعلیم مت دو۔ ان کی تجارت میں کوئی خیر نہیں ہے۔ ان کی قیمت حرام ہے۔ اسی‬
‫بارے میں یہ آیت نازل ہوئی کہ "لوگوں میں سے کچھ ایسے بھی ہیں جو فضول باتیں خریدتے‬
‫ہیں تاکہ اس کے ذریعے وہ اللہ کی راہ سے بھٹکا دیں۔"‬

‫ایسی محفلوں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ان کاموں میسسں سسے ایسسک‬
‫قرار دیا جن کے بعد اہل زمین اللہ کے عذاب کے مستحق ہو جایا کرتے ہیں‪:‬‬
‫حدثنا صالح بن عبد الله الترمذي حدثنا الفسسرج بسسن فضسسالة أبسسو فضسسالة الشسسامي عسسن‬
‫يحيى بن سعيد عن محمد بن عمر بن علي عن علي بن أبي طالب قال قال رسسسول‬
‫الله صلى الله عليه وسلم ‪ :‬إذا فعلت أمتي خمس عشرة خصلة حل بها البلء فقيل‬
‫وما هن يا رسول الله قال إذا كان المغنم دول والمانة مغنما والزكاة مغرمسسا وأطسساع‬
‫الرجل زوجته وعق أمه وبر صديقه وجفا أباه وارتفعت الصوات في المساجد وكسسان‬
‫زعيسم القسوم أرذلهسم وأكسسرم الرجسل مخافسة شسسره وشسربت الخمسور ولبسس الحريسر‬
‫واتخذت القينات والمعازف ولعن آخر هذه المة أولها فليرتقبوا عند ذلك ريحا حمراء‬
‫أو خسفا ومسخا۔ )ترمذی‪ ،‬کتاب الفتن‪ ،‬حديث ‪(2210‬‬
‫سیدنا علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم نسسے‬
‫فرمایا‪" ،‬جب میری امت میں پندرہ خصلتیں اکٹھی ہو جائیں گی تو ان کے لئے مصیبتوں ک سے‬
‫دروازے کھل جائیں گے۔" پوچھا گیا‪" ،‬یا رسول اللہ! وہ کیا ہیں؟"‬
‫فرمایا‪" ،‬جب چرواہے امیر ہو جائیں گے‪ ،‬دولت ہی ایمسسان بسسن جسسائے گسسی‪ ،‬زکسسوۃ کسسو جرمسسانہ‬
‫سمجھا جانے لگے گا‪ ،‬مرد اپنی بیسسوی کسسی اطساعت اور مسساں کسسی نافرمسسانی کیسسا کریسسں گسے‪،‬‬
‫دوست کے ساتھ نیکی اور باپ کے ساتھ ظلم کیا جائے گا‪ ،‬مسجدوں میں شسور مچایسا جسائے‬
‫گا‪ ،‬قوم کے لیڈر ان کے بدترین لوگ ہوں گے‪ ،‬کسی شخص کسی عسزت اس کسی بسرائی سسے‬
‫محفوظ رہنے کے لئے کی جائے گسسی‪ ،‬شسسراب پسسی جسسائے گسسی‪ ،‬ریشسسم پہنسسا جسسائے گسسا‪ ،‬رقسسص و‬
‫موسیقی کی ماہر لونڈیوں اور آلت موسیقی کا اہتمام کیا جائے گا اور اس امت کے بعد کے‬
‫لوگ پہلے زمانے کے لوگوں پر لعنت بھیجیں گے۔ جب ایسا ہو گا تو انہیں سرخ آندھی‪ ،‬زمیسسن‬
‫میں دھنسا دیے جانے اور صورتیں مسخ ہونے کا انتظار کرنا چاہیے۔‬
‫‪119‬‬

‫افسوس کہ لونسڈیوں کسو قحبسہ گسری اور رقسص و موسسیقی کسے لئے اسستعمال کرنسا‬
‫مسلمانوں کے ان جرائم میں سے ہے جن پر انہوں نے اپنے نبی کسسی واضسسح تعلیمسسات‬
‫کے خلف عمل کیا۔ موجودہ دور میں قانونی غلمی کا خاتمہ ہو چکسسا ہے‪ ،‬لیکسسن اس‬
‫مقصد کے لئے لڑکیوں کی تعلیم و تربیت کے ادارے پوری مسلم دنیا میسسں قسائم ہیسں‬
‫جہاں تربیت دے کر انہیں مغربی اور مشرق وسطی کے ممالک میں اسمگل کر دیسسا‬
‫جاتا ہے۔ یہ لڑکیاں اگرچہ قانونی طور پر آزاد ہوتی ہیں مگر عمل ً غلم ہی ہوتی ہیں۔‬
‫اس پر تفصیلی بحث ہم نسے بسساب ‪ 17‬میسسں کسسی ہے۔ جسسب تسسک یسہ معسساملت ہمسسارے‬
‫معاشروں میں موجود ہیں‪ ،‬ہمیں اللہ کے عذاب کا انتظار کرنا چاہیے جس کی لپیسسٹ‬
‫میں نہ صرف یہ بدکار آئیں گے بلک سہ وہ نیسسک لسسوگ ب ھی آ جسسائیں گ سے جسسو اس پسسر ان‬
‫مجرموں کو روکنے کی کوشش نہیں کرتے۔‬

‫لون ڈیوں کی شادیاں کر دین ے کا حکم‬
‫اللہ تعالی نے لونڈیوں کو عصمت فروشی سے محفوظ رکھنے کے لئے ان کی شسسادی‬
‫کی ترغیب دلئی۔‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‬
‫مى ِ‬
‫وَأنك ِ ُ‬
‫من ْك ُ ْ‬
‫حوا الَيا َ‬
‫ه َوا ِ‬
‫ِ‬
‫سعٌ‬
‫ن فَ ْ‬
‫ضل ِهِ َوالل ّ ُ‬
‫م ْ‬

‫ن يَ ُ‬
‫ه‬
‫كون ُسسوا فُ َ‬
‫ن ِ‬
‫صال ِ ِ‬
‫ن ِ‬
‫م إِ ْ‬
‫م الل ّس ُ‬
‫ق سَراءَ ي ُغْن ِهِ س ْ‬
‫مائ ِك ُ ْ‬
‫م وَإ ِ َ‬
‫عَباد ِك ُ ْ‬
‫َوال ّ‬
‫م ْ‬
‫حي َ‬
‫م ۔ )قرآن ‪(24:32‬‬
‫ع َِلي ٌ‬

‫تم میں سے جو )مرد و عورت( مجرد ہوں‪ ،‬ان کی شادیاں کسسر دیسسا کسسرو اور تم ہارے لون سڈی‬
‫غلموں میں سے جو صالح ہوں ان کے نکاح بھی کر دیا کرو۔ اگر وہ غریب ہوں تو اللہ انہیسسں‬
‫اپنے فضل سے غنی کر دے گا۔ اللہ بڑی وسعت اور علم وال ہے۔‬

‫آزاد افراد کے لئے لونڈیوں سے شادی کرنے میں دو مسائل تھے۔ ایک تو یہ کہ لونڈیوں‬
‫کو خاص طور پر قحبہ گری کی تربیت دی جاتی تھی۔ ایسی عورت سے شسسادی کسسر‬
‫کے اس کے ساتھ نباہ کرنا ایک شریف آدمی کے لئے بڑا مشکل تھا۔ دوسرے یہ کسسہ ان‬
‫سے ہونے والی اولد کو بھی "غلم ماں کی اولد" ہونے کا طعنہ دیا جاتسسا جسسو ان ک سے‬
‫لئے ناقابل برداشت تھا۔ اس وجہ سے لوگوں میں ان سے نکاح کرنے میسسں رغبسست ن سہ‬
‫پائی جاتی تھی۔ اللہ تعالی نے خاص طور پر مسلمانوں کے ان غریب لوگوں کو جسسو‬
‫آزاد خواتین کے مہر ادا کرنے کی طاقت نہ رکھتے ت ھے‪ ،‬ترغیسسب دلئی کسہ وہ لونسڈیوں‬
‫سے نکاح کر لیں۔‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‬
‫ت فَ ِ‬
‫من َسسا ِ‬
‫مؤ ْ ِ‬
‫صَنا ِ‬
‫ست َط ِعْ ِ‬
‫م ْ‬
‫ن َينك ِ َ‬
‫م ط َوْل ً أ ْ‬
‫م يَ ْ‬
‫مسسان ُك ُ ْ‬
‫ت أي ْ َ‬
‫مل َك َس ْ‬
‫مسا َ‬
‫ن َ‬
‫ت ال ْ ُ‬
‫ح ال ْ ُ‬
‫من ْك ُ ْ‬
‫ن لَ ْ‬
‫وَ َ‬
‫ح َ‬
‫مس ْ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ن‬
‫هسس‬
‫ل‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ن‬
‫ذ‬
‫إ‬
‫بسس‬
‫ن‬
‫ه‬
‫حو‬
‫ك‬
‫فان‬
‫ض‬
‫ع‬
‫ب‬
‫ن‬
‫م‬
‫م‬
‫ك‬
‫ض‬
‫ع‬
‫ب‬
‫م‬
‫ك‬
‫ن‬
‫ما‬
‫إي‬
‫ب‬
‫م‬
‫ل‬
‫ع‬
‫أ‬
‫ه‬
‫ل‬
‫وال‬
‫ت‬
‫نا‬
‫م‬
‫ؤ‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫م‬
‫ك‬
‫ت‬
‫يا‬
‫ت‬
‫ف‬
‫ن‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫ُ ِ َ ِ َ ُ‬
‫م ْ ََ ِ ْ‬
‫ِ ُ ُ ّ ِ ِ ِ ْ ِِ ّ‬
‫ُ ِِ َ ِ ْ َْ ُ ْ ِ ْ َْ ٍ‬
‫َ‬
‫وآتوهُن أ ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن۔ )قسسرآن‬
‫دا‬
‫س‬
‫خ‬
‫أ‬
‫ت‬
‫ذا‬
‫س‬
‫خ‬
‫ت‬
‫م‬
‫ول‬
‫ت‬
‫حا‬
‫ف‬
‫سا‬
‫س‬
‫س‬
‫م‬
‫ر‬
‫س‬
‫ي‬
‫غ‬
‫ت‬
‫نا‬
‫س‬
‫ص‬
‫ح‬
‫م‬
‫ف‬
‫رو‬
‫ع‬
‫م‬
‫ل‬
‫سا‬
‫س‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ه‬
‫ر‬
‫جو‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫ّ‬
‫ٍ‬
‫ِ‬
‫ٍ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ َ ُ َ‬
‫َ ُ‬
‫ّ ُ َ ّ ِ َ ْ ُ ِ ُ ْ َ‬
‫َ ٍ‬
‫َ‬
‫‪(4:25‬‬
‫جو شخص تم میں سے اتنی استطاعت نہ رکھتا ہو کہ وہ آزاد مسلمان خواتین سے شادی کر‬
‫سکے تو تمہاری ان لڑکیوں میں سے کسی سے نکاح کر لے جو تمہاری ملکیت میں ہیسسں اور‬
‫مومن ہیں۔ اللہ تمہارے ایمان کا حال بہتر جانتا ہے لہذا ان کے سرپرستوں کی اجازت سے ان‬
‫سے نکاح کر لسسو اور معسسروف طریقسے سسے ان کسے م ہر ادا کسسرو‪ ،‬تسساکہ وہ حصسسار نکسساح میسسں‬
‫محفوظ ہو کر رہیں اور آزاد شہوت رانی اور چوری چھپے آشنائی سے بچ سکیں۔‬

‫لون ڈیوں کی تعلیم و تربیت اور ان ہیں‬
‫آزاد کر ک ے ان س ے شادی کا حکم‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے لونڈیوں کسسی اچ ھی تعلیسسم و تربیسست کسسر ک سے‬
‫انہیں آزاد کر کے ان سے نکاح کرنے کی بھرپور ترغیب دی۔‬
‫‪120‬‬

‫أخبرنا محمد‪ ،‬هم ابن سلم‪ ،‬حدثنا المحاربي قال‪ :‬حدثنا صسسالح بسسن حيسسان قسسال‪ :‬قسسال‬
‫عامر الشعبي‪ :‬حدثني أبو بردة‪ ،‬عسن أبيسه قسال‪ :‬قسال رسسول اللسه صسلى اللسه عليسه‬
‫وسلم‪) :‬ثلثة لهم أجران‪ :‬رجل من أهل الكتاب‪ ،‬آمن بنبيه وآمسسن بمحمسسد صسسلى اللسسه‬
‫عليه وسلم‪ ،‬والعبد المملوك إذا أدى حق الله وحق مسواليه‪ ،‬ورجسل كسانت عنسده أمسة‬
‫يطؤها‪ ،‬فأدبهسسا فأحسسسن أدبهسسا‪ ،‬وعلمهسسا فأحسسسن تعليمهسسا‪ ،‬ثسسم أعتقهسسا فتزوجهسسا‪ ،‬فلسسه‬
‫أجران(‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب العلم‪ ،‬حديث ‪(97‬‬
‫ابوبردہ کے والد رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ارشاد‬
‫فرمایا‪ :‬تین افراد کے لئے دوگنا اجر ہے۔ )پہل( اہل کتاب کا کوئی فرد جو اپن سے نسسبی پسسر ب ھی‬
‫ایمان لیا اور اس کے بعد محمد پر بھی ایمان لیا۔ )دوسرا( ایسا غلم کو الل سہ اور اپن سے آقسسا‬
‫دونوں کا حق ادا کرتا ہے۔ اور )تیسرا( وہ شخص جسسس کسسی کسسوئی لون سڈی ہو جسسس س سے وہ‬
‫ازدواجی تعلقات قائم کرنا چاہے تو اسے بہترین اخلق اور علم کسی تعلیسم دے‪ ،‬اس کسے بعسد‬
‫اسے آزاد کر کے اس سے شادی کر لے۔ اس کے لئے بھی دوگنا اجر ہے۔‬

‫لون ڈیوں ک ے ازدواجی حقوق کا بیوی‬
‫ک ے حقوق س ے تقابلی جائز ہ‬
‫لونڈیوں کے ضمن میں اہم ترین اصلح یہ تھی کہ ان سے ازدواجی تعلقات کو صرف‬
‫اور صرف ان کے آقا تک محدود قرار دے دیا گیا۔ اس طریقے سے لونڈی اپنسے مالسسک‬
‫کی ایک قسم کی بیوی ہی قرار پائی۔ اگر لونڈی کسی اور شخص کے ساتھ شسسادی‬
‫شدہ ہو تو مالک کے لئے اس سے ازدواجی تعلقات ناجائز قرار دیے گئے۔‬
‫اس مسئلے پر چونکہ بہت سے لوگوں کو تردد ہے‪ ،‬اس وجہ س سے ب ہتر ہے ک سہ ہم‬
‫بیوی اور لونڈی کے حقوق و فرائض کا ایک تقابلی جائزہ پیش کر دیں تاکہ ی سہ واضسسح‬
‫ہو جائے کہ مالک اور لونڈی کے درمیسسان ازدواجسسی تعلقسسات کسسی جسسو اجسسازت دی گئی‬
‫تھی‪ ،‬اس کے نتیجے میں لونڈی کو مالک کی بیوی ہی کی ایسسک قسسسم قسسرار دیسسا گیسسا‬
‫تھا۔ ان حقوق و فرائض کے بارے میں مسلمانوں ک سے ا ہل علسسم میسسں ایسسک عمسسومی‬
‫اتفاق رائے پایا جاتا ہے۔‬
‫میاں اور بیوی کا تعلق ایک معاشرتی اور قانونی عمککل ک کے آقا اور لونڈی کا تعلق بھی ایک معاشککرتی اور قککانونی عمککل‬
‫نتیجے میں وجکود میکں آتکا ہے جسکے نکککاح کہتکے ہیکں۔ اس کے نتیجے میں وجود میں آتا ہے جس کے بعد انہیں ازدواجی‬
‫قانونی عمل کے بعد ہی انہیں ازدواجی تعلقات قائم کرنے کی تعلق کی اجازت دے دی جاتی ہے۔‬
‫اجازت دی جاتی ہے۔‬
‫بیوی سے ازدواجی تعلقات قائم کرنے کے نککتیجے می کں ایککک لونڈی سے ازدواجی تعلقات قائم کرنے کے نککتیجے میکں ب ھی‬
‫شخص "محصن" یعنی بدکاری وغیرہ سے محفوظ قرار پاتا ایک شخص "محصن" قرار پاتککا ہے۔ اس شککخص پککر ب ھی‬
‫قانونی طور پر وہی احکککام نافککذ کئے جککائیں گکے جککو شککادی‬
‫ہے۔‬
‫شدہ مرد پر نافذ ہوتے ہیکں۔ )موطککاء مالککک‪ ،‬کتککاب النکککاح‪،‬‬
‫‪(1555‬‬
‫بیوی سے خاوند کی اولد اپنے باپ کککی وراثککت میکں پککوری لونڈی سے آقا کی اولد بھی اپنے باپ کی وراثت میں پوری‬
‫طرح حق دار ہوتی ہے اور بیککوی اور لونکڈی ککی اولد ککے‬
‫طرح حق دار ہوتی ہے۔‬
‫سماجی رتبے میں کوئی فرق نہیں ہوتا۔‬
‫بیوی کی تمککام ضککروریات کککا خیککال رکھنککا خاونککد کککی ذمکہ لونڈی کی تمام ضروریات کا خیال رکھنا آقککا کککی ذم کہ داری‬
‫ہے۔‬
‫داری ہے۔‬
‫اگر خاوند بیوی کی ضروریات پککوری نہی کں کرتککا تککو بیککوی اگر آقا لونڈی کی ضروریات کا خیال نہیں رکھتککا تککو لونکڈی‬
‫عدالت میں دعوی کر کے اپنے حقوق وصول کر سکتی ہے۔ بھی عدالت میں دعوی کر کے اپنے حقوق وصول کر سکتی‬
‫ہے۔‬
‫اگر بیوی اپنے خاوند سے مطمئن نہ ہو تکو وہ اس سکے طلق اگر لونڈی اپنے آقا سے مطمئن نہ ہو تو وہ اس سے آزادی کککا‬
‫مطالبہ "مکاتبت" کی صورت میں کر سکتی ہے۔‬
‫کا مطالبہ کر سکتی ہے۔‬
‫اگر خاوند بیوی کے ازدواجی حقوق پورے نہ کر سکتا ہو تو اگر آقا لونڈی کے ازدواجی حقوق پورے نہ کر سکتا ہو‪ ،‬تککو‬
‫‪121‬‬

‫بیوی اس سے طلق لے سکتی ہے۔‬
‫اگر خاتون پہلے سے شککادی شککدہ ہو اور اس کککی اپنکے پہلکے‬
‫خاوند سے علیحدگی ہو جائے یا پہل خاوند فوت ہو جائے تککو‬
‫اس صورت میکں دوسککری شککادی ککے لئے خککاتون کککو کچکھ‬
‫عرصہ انتظار کرنا پڑتا ہے تاکہ اگر حمککل موجکود ہو تککو وہ‬
‫واضح ہو جائے۔ اس عمل کو "استبراء" کہا جاتا ہے۔ حمککل‬
‫ہونے کی صورت میں وضع حمل تککک خککاتون کککو دوسککری‬
‫شادی کی اجازت نہیں ہے۔‬
‫کسی خاتون سے شادی کے بعد اس کی ماں اور بیککٹی‪ ،‬اس‬
‫خاتون کے شوہر کے لئے ہمیشہ کے لئے حرام ہو جاتی ہیں۔‬
‫ایک بیوی کی موجودگی میں شوہر اس کی بہن‪ ،‬پھوپھی یککا‬
‫خالہ سے شادی نہیں کر سکتا۔‬
‫خاوند سے طلق حاصل کرنے کے بعد خاتون کو اجازت ہے‬
‫کہ وہ جہاں چاہے شادی کر سکتی ہے۔‬

‫لونڈی کے سامنے دو راسککتے ہیکں‪ :‬یککا تککو وہ آقککا سکے مطککالبہ‬
‫کرے کہ وہ اس کی کہیں شادی کر دے یا پ ھر اس کے آزاد کککر‬
‫دے۔‬
‫اگر لونڈی بھی پہلے کسی اور مالک ککے پککاس ت ھی تککو اس‬
‫صورت میں اسے دوسککرے مالککک ککے پککاس آنکے سکے پہلکے‬
‫استبراء کرنککا ضککروری ہے تککاکہ اگککر اسکے حمککل ہو تککو وہ‬
‫واضح ہو جائے۔ حمل ہونے ککی صکورت میکں وضکع حمکل‬
‫تک دوسرے مالک کو اس ک کے سککاتھ ازدواجککی تعلقککات کککی‬
‫اسے اجازت نہیں ہے۔ )موطاء مالک‪ ،‬کتاب النکککاح‪,1539 ،‬‬
‫‪(1735‬‬
‫کسی لونڈی سے ازدواجی تعلقات قائم کرنے ککے بعککد لونکڈی‬
‫کی ماں اور بیٹی بھی آقا کے لئے ہمیشہ ک کے لئے حککرام ہو‬
‫جاتی ہیں۔ )موطاء مالک‪ ،‬کتاب النکاح‪(1547 ,1543 ،‬‬
‫ایک لونڈی کی موجودگی میں آقکا اس ککی ب ہن‪ ،‬پ ھوپھی یکا‬
‫خککالہ س کے ازدواجککی تعلقککات قککائم نہی کں کککر سکککتا۔ )موطککاء‬
‫مالک‪ ،‬کتاب النکاح‪(1539 ،‬‬
‫آقا سے آزادی حاصککل کرنکے ککے بعککد لونکڈی کککو یکہ اختیککار‬
‫حاصل ہے کہ وہ جہاں چاہے شادی کککر سکککتی ہے۔ اگککر اس‬
‫کے آقا نے پہلے ہی اس کی شادی کسی سے کککر رک ھی ہے‪،‬‬
‫تو آزادی کے وقت لونڈی کو یہ حق حاصل ہے ک کہ چککاہے تککو‬
‫وہ اس شادی کو برقرار رکھے اور چاہے تککو اس شککادی کککو‬
‫بغیر طلق کے ختم کر دے۔ اسے "خیار عتق" کہا جاتا ہے۔‬
‫)موطاء مالک‪ ،‬کتاب النکاح‪(1625 ،‬‬

‫بیوی اور لونڈی میں جو فرق ہے‪ ،‬اس کی تفصیل یہ ہے‪:‬‬
‫بیوی اپنی مرضی سے خاوند کے نکاح میں آتی ہے۔ اس کی‬
‫مرضی کے بغیر نکاح واقع ہی نہیں ہو سکتا۔‬
‫بیوی کا اگر اپنے خاوند سے بچہ ہو جائے تو اس کی قککانونی‬
‫حیثیت میں کوئی فرق واقع نہیں ہوتا۔‬

‫آزاد خاتون کی اپنے خاوند سے علیحدگی کککی صککورت می کں‬
‫اس کی عدت تین حیض )یکا ط ہر( اور بیکوگی ککی صکورت‬
‫میں چار ماہ دس دن کی عککدت مقککرر کککی گئی۔ حمککل ہونے‬
‫کی صورت میں یہ عدت وضع حمل ہی ہے۔‬

‫لونڈی کے معاملے میں یہ ضروری نہی کں ک کہ وہ اپنککی آزادان کہ‬
‫مرضی سے ہی آقا کی ملکیت میں آئی ہو لیکن اگر اسے اپنا‬
‫آقا پسند نہ ہو تو وہ مکاتبت حاصل کر کے فوری طور پر آقا‬
‫سے نجات حاصل کر سکتی ہے۔‬
‫لونڈی کا اگر اپنے آقا سے بچہ ہو جککائے تککو اس کککی قککانونی‬
‫حیثیت یک دم بڑھ جاتی ہے۔ ایسی لونڈی کو ام ولد کہا جاتککا‬
‫ہے۔ ام ولککد‪ ،‬مکککاتب کککی طککرح غلم اور آزاد کککی درمیککانی‬
‫حالت میں آ جاتی ہے اور آقا کے مرنے کی صککورت می کں وہ‬
‫خود بخود آزاد ہو جاتی ہے۔‬
‫لون کڈی کککی عککدت دو حیککض مقککرر کککی گئی۔ صککحابہ کککرام‬
‫رضی اللہ عنہم کے زمانے میں بیککوہ لون کڈی کککی عککدت ایککک‬
‫حیض مقرر کی گئی۔ حمل ہونے کی صورت می کں ی کہ عککدت‬
‫وضع حمل ہی ہے۔‬

‫بیوی اور لونڈی کے مابین اس تفاوت میں دوسرا نکتہ‪ ،‬لونڈی کے حق میں ہے۔ تیسرا‬
‫نکتہ بہت زیادہ اہم نہیں ہے۔ صرف پہل نکتہ ایسا ہے جس کے بارے میں یہ کہا جا سسسکتا‬
‫ہے کہ اس معاملے میں لونڈی‪ ،‬بیوی کی نسبت کمتر درجے کی حامل ہے۔ دین اسلم‬
‫نے اس معاملے میں یہ اصلح کی کہ لونڈی کو اگر اپنا آقا پسند نہ ہو‪ ،‬تسسو وہ اس کسسی‬
‫ملکیت میں آنے کے فورا ً بعد ہی‪ ،‬ازدواجی تعلقسسات قسسائم کئے بغیسسر‪ ،‬وہ مکسساتبت کسسر‬
‫سکتی ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میں اس کی مثال موجسسود‬
‫ہے اور ایسا کرنے کی صورت میں پورا معاشرہ اس خاتون کی حمایت اور مدد کسسے‬
‫لئے تیار تھا جو اپنے آقا کو ناپسند کرتی ہو۔‬
‫حدثنا عبد العزيز بن يحيى أبو الصبغ الحراني‪ ،‬قال‪ :‬حدثني محمسسد يعنسسي ابسسن سسسلمة‬
‫عن ابن إسحاق‪ ،‬عن محمد بن جعفر بن الزبير‪ ،‬عن عسسروة بسسن الزبيسسر‪ ،‬عسسن عائشسسة‬
‫]رضي الّله عنها[ قالت‪ :‬وقعت جويرية بنت الحارث بن المصطلق في سهم ثابت بن‬
‫‪122‬‬

‫م له‪ ،‬فكاتبت على نفسسسها‪ ،‬وكسسانت امسسرأةً م ّ‬
‫لحسسة تأخسسذها‬
‫قيس بن شماس‪ ،‬أو ابن ع ّ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫العين‪ ،‬قالت عائشة رضي الله عنها‪ :‬فجاءت تسأل رسول الله صلى الله عليه وسلم‬
‫في كتابتها‪ ،‬فلما قامت على البسساب فرأيتهسسا كرهست مكانهسسا وعرفسست أن رسسسول الل ّسسه‬
‫صلى الّله عليه وسلم سيرى منها مثل الذي رأيت‪ ،‬فقالت‪ :‬يارسول الّله‪ ،‬أنا جويريسسة‬
‫بنت الحارث‪ ،‬وإنما كان من أمري ما ليخفى عليك‪ ،‬وإني وقعت في سسهم ثسسابت بسسن‬
‫قيس بن شماس‪ ،‬وإني كاتبت على نفسي فجئت أسسسألك فسسي كتسسابتي فقسسال رسسسول‬
‫الّله صلى الّله عليه وسلم‪" :‬فهل لك إلى ما هو خيٌر منه؟" قالت‪ :‬ومسسا هسسو يارسسسول‬
‫الّله؟ قال‪" :‬أؤّدي عنك كتابتك وأتزوجسسك" قسسالت‪ :‬قسسد فعلسست‪ ،‬قسسالت‪ :‬فتسسسامع تعنسسي‬
‫جويرية‪ ،‬فأرسلوا ما في أيديهم‬
‫س أن رسول الّله صلى الّله عليه وسلم قد تزوج ُ‬
‫النا َ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫ي فأعتقوهم وقالوا‪ :‬أصهار رسول الله صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم‪ ،‬فمسسا رأينسسا‬
‫من ال ّ‬
‫سب ْ ِ‬
‫امرأة كانت أعظم بركة على قومها منها‪ ،‬أعتق في سببها مسسائة أهسسل بيسست مسسن بنسسي‬
‫المصطلق‪) .‬ابو داؤد‪ ،‬كتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(3931‬‬
‫سیدتنا عائشہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ جسسویریۃ بنسست حسسارث بسسن مصسسطلق‪ ،‬ثسسابت بسسن‬
‫قیس بن شماس رضی اللہ عنہ یا ان کے کزن کے حصے میں آئیسسں۔ ان ہوں ن سے ان س سے اپنسسی‬
‫آزادی کے بارے میں مکاتبت کر لی۔ آپ ایک نہایت شاندار خسساتون تھیسسں اور آپ پسسر نظسسر ن سہ‬
‫ٹکتی تھی۔ سیدہ عائشہ بیان کرتی ہیں‪" ،‬جویریہ رسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم کسے‬
‫پاس اپنی مکاتبت کے سلسلے میں آئیں۔ جب وہ دروازے میں کھڑی تھیں تو مجھے اندازہ ہو‬
‫گیا کہ انہیں اپنی موجودہ جگہ پسند نہیں ہے۔"‬
‫وہ کہنے لگیں‪" ،‬یا رسول اللہ! میں جویریہ بنت حارث ہوں۔ میرا معسساملہ آپ ن سے مخفسسی نہیسسں‬
‫ہے۔ میں ثابت بن قیس بن شماس کے حصے میں آئی ہوں۔ میں نے ان سے اپنسسی آزادی ک سے‬
‫سلسلے میں مکاتبت کر لی ہے۔ میسسں آپ سسے اس مکسساتبت کسے معسساملے میسسں )مسسدد کسسی(‬
‫درخواست کرنے آئی ہوں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬اگر میں آپ کسسو‬
‫اس سے بہتر پیشکش کروں تو کیا آپ کو قبول ہو گسسی؟ وہ کہن سے لگیسسں‪" ،‬وہ کیسسا یسسا رسسسول‬
‫اللہ؟" آپ نے فرمایا‪" ،‬میں آپ کی کتابت کی پوری رقم ادا کر دوں اور آپ سے شادی کسسر‬
‫لوں؟" وہ کہنے لگیں‪" ،‬میں یہی کرنا چاہوں گی۔"‬
‫لوگوں نے جب یہ بات سنی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جویریہ سے شسادی کسسر‬
‫لی ہے تو وہ کہنے لگے‪" ،‬یہ )بنو عبدالمصطلق کے( قیدی تو اب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسسہ‬
‫وسلم کے سسرالی رشتے دار ہو گئے‪ ،‬ہم انہیں قید کیسے رکھیسسں۔" ان ہوں ن سے ان سسسب کسسو‬
‫آزاد کر دیا۔ سیدہ عائشہ کہتی ہیں‪" ،‬میں نے جویریہ سے بڑھ کر کوئی خاتون نہیں دیکھی جو‬
‫اپنسسی قسسوم ک سے لئے اتنسسی بسسابرکت ثسسابت ہوئی ہو ک سہ ان ک سے بسساعث ان ک سے رشسستے دار بنسسو‬
‫عبدالمصطلق کے سو کے قریب قیدی آزاد ہوئے۔"‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے دیگر مواقع پر بھی سسسسرالی تعلقسسات قسسائم‬
‫کر کے جنگی قیدیوں کو آزاد کرنے کی ترغیسسب دلئی ت ھی۔ اس کسسی تفصسسیل آگسے آ‬
‫رہی ہے۔‬
‫ہم بیان کر چکے ہیں کہ صحابہ و تابعین کے زمانے میں اگر کوئی لون سڈی مکسساتبت کسسر‬
‫لیتی تو اس کے بعد اس کے ساتھ ازدواجی تعلق قسسائم کرنسے کسسو قابسسل تعزیسسر جسسرم‬
‫قرار دیا جاتا۔‬
‫ه َقسا َ‬
‫ن‬
‫جسسل وَط ِس َ‬
‫ن ك َسسا َ‬
‫ل إِ ْ‬
‫ن قََتاد َة َ ِفي َر ُ‬
‫َ‬
‫ن الد ّ ْ‬
‫مك َسسات َب َت َ ُ‬
‫ئ ُ‬
‫ن َ‬
‫ي ‪ ,‬عَ ْ‬
‫وائ ِ ّ‬
‫ست َ َ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫مهْد ِيّ ‪ ,‬ع َ ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قسُر‪.‬‬
‫س ع َلي ْسهِ العُ ْ‬
‫س‬
‫ي‬
‫ل‬
‫و‬
‫د‬
‫س‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ه‬
‫س‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ف‬
‫ه‬
‫ت‬
‫ع‬
‫و‬
‫سا‬
‫س‬
‫ط‬
‫ت‬
‫ن‬
‫سا‬
‫س‬
‫ك‬
‫ن‬
‫إ‬
‫و‬
‫‪,‬‬
‫د‬
‫ح‬
‫ل‬
‫وا‬
‫ر‬
‫ْ‬
‫ق‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ف‬
‫ها‬
‫ه‬
‫ر‬
‫ك‬
‫ت‬
‫س‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ا ْ َ َ‬
‫َ‬
‫ُ َ‬
‫َِ‬
‫)مصنف ابن ابی شيبة‪ ،‬كتاب الحدود‪ ،‬حديث ‪(28619‬‬
‫قتادہ ایسے شخص کے بارے میں بیان کرتے ہیں جس نسے اپنسسی مکسساتبہ لون سڈی سسے ازدواجسسی‬
‫تعلق قائم کیا تھا‪ ،‬وہ کہتے ہیں‪" ،‬اگر اس نے ایسا جبرا ً کیا ہے تو اسے )بدکاری کسسی( شسسرعی‬
‫حد کے علوہ سزا بھی دی جائے گی۔ اگر اس نے ایسا اس کی رضامندی سے کیا ہے تسسو پ ھر‬
‫اسے صرف شرعی حد لگائی جائے گی اور اضافی سزا نہ دی جائے گی۔‬

‫‪123‬‬

‫لون ڈیوں کی عفت و عصمت کی‬
‫حفاظت‬
‫جیسا کہ ہم بیان کر چکے ہیں کہ عربوں میں لونڈیوں کو خساص طسور پسر قحبسہ گسری‬
‫کی تعلیم دی جاتی تھی۔ اس وجہ سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے بطور‬
‫خاص ان لونڈیوں کی تعلیم و تربیت کی طرف توجہ دی اور ان کے آقاؤں کسسو حکسسم‬
‫دیا کہ وہ ان کی اخلقی تعلیم و تربیت کر کسے انہیسں آزاد کسر دیسں۔ دوسسری طسرف‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے لونڈیوں کی عفت و عصمت کسسو آزاد عسسورت‬
‫کے برابر قرار دیا۔ لونڈی کی آبرو ریزی کرنے کی وہی سزا مقرر فرمسسائی گئی جسسو‬
‫کہ آزاد عورت کی آبرو ریزی کرنے کی سزا تھی۔‬
‫حدثنا قتيبة بن سعيد وأبو كامل الجحدري )واللفظ لقتيبة(‪ .‬قال‪ :‬حدثنا أبو عوانة عسسن‬
‫سماك‪ ،‬عن سعيد بن جبير‪ ،‬عن ابن عباس؛ أن النسسبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم قسسال‬
‫لماعز بن مالك )أحق ما بلغني عنك؟( قال‪ :‬وما بلغك عني؟ قال )أنك وقعت بجاريسسة‬
‫آل فلن( قال‪ :‬نعم‪ .‬قال‪ :‬فشهد أربسسع شسسهادات‪ .‬ثسسم أمسر بسسه فرجسسم‪) .‬مسسسلم‪ ،‬كتساب‬
‫الحدود‪ ،‬حديث ‪ ،4427‬نسائی سنن الکبری‪ ،‬کتاب الرجم‪ ،‬حديث ‪(7134‬‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ماعز بن‬
‫مالک سے پوچھا‪" ،‬کیا جو خبر مجھ تک پہنچی ہے وہ سچ ہے؟" انہوں نے کہا‪" ،‬آپ تک کیا بسسات‬
‫پہنچی ہے؟" آپ نے فرمایا‪" ،‬تم نے فلں کی لونڈی کی آبرو ریزی کسسی ہے؟" ان ہوں ن سے چسسار‬
‫مرتبہ قسم کھا کر اقرار کر لیا۔ آپ نے انہیں رجم کرنے کا حکم دیا۔‬

‫اگر کوئی لونڈی کسی شخص کی بیوی کی ملکیت ہو تو اسلم سسے پہلسے یسہ کسسوئی‬
‫بڑی بات نہ تھی کہ خاوند اپنی بیوی کی لونڈی سے بھی ازدواجسسی تعلقسات قسائم کسر‬
‫لے۔ دین اسلم نے اسے مکمل حرام قرار دیا اور ایسی صورت میں اس شخص کو‬
‫سزا دینے کا حکم دیا۔‬
‫حدثنا أحمد بن صالح‪ ،‬ثنا عبد الرزاق‪ ،‬أخبرنسسا معمسسر‪ ،‬عسسن قتسسادة‪ ،‬عسسن الحسسسن‪ ،‬عسسن‬
‫قبيصة بن حريث‪ ،‬عن سلمة بن المحّبق أن رسول الّله صلى الّله عليه وسلم قضسسى‬
‫حّرة وعليه لسسسيدتها مثلهسسا‪،‬‬
‫في رجل وقع على جارية امرأته‪ :‬إن كان استكرهها فهي ُ‬
‫فِإن كانت طاوعته فهي له وعليه لسيدتها مثلها‪ .‬قال أبو داود‪ :‬رواه يسسونس بسسن عبيسسد‬
‫وعمرو بن دينار‪ ،‬ومنصور بن زاذان‪ ،‬وسلم عن الحسن هذا الحديث بمعناه‪ ،‬لم يذكر‬
‫يونس ومنصور قبيصة‪) .‬ابو داؤد‪ ،‬كتاب الحدود‪ ،‬حديث ‪ ،4460‬نسائی سنن الکسسبری‪،‬‬
‫حديث ‪(7231‬‬
‫سیدنا سلمہ بن المحبق رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم‬
‫نے ایک ایسے شخص کے بارے میں یسہ فیصسسلہ فرمایسسا جسسس نسے اپنسسی بیسسوی کسسی لونسڈی سسے‬
‫ازدواجی تعلقات قائم کر لئے تھے‪" :‬اگر تو اس نے ایسا زبردستی کیا ہے تسسو اس لون سڈی کسسو‬
‫آزاد کر دیا جائے اور اس شخص کے لئے لزم ہے کہ وہ ویسی ہی لونڈی کی خدمات کو خرید‬
‫کر اپنی بیوی کے حوالے کرے۔ اگر اس نے ایسا لونڈی کی رضامندی سے کیا تھا تو وہ لونسسڈی‬
‫اسی شخص کو دے دی جائے اور اس شخص کے لئے لزم ہے ک سہ وہ ویسسسی ہی لون سڈی کسسی‬
‫خدمات کو خرید کر اپنی بیوی کے حوالے کرے۔‬

‫وقال أبو الزناد‪ ،‬عن محمد بن حمزة بن عمرو السلمي‪ ،‬عسسن أبيسسه‪ :‬أن عمسسر رضسسي‬
‫الله عنه بعثه مصدقا‪ ،‬فوقع رجل على جارية امرأته‪ ،‬فأخسسذ حمسسزة مسسن الرجسسل كفيل‬
‫حتى قدم على عمر‪ ،‬وكان عمسر قسد جلسده مسائة جلسدة‪ ،‬فصسدقهم وعسذره بالجهالسة‪.‬‬
‫)بخاری‪ ،‬كتاب الکفالة‪ ،‬حديث ‪(2290‬‬
‫سیدنا حمزہ بن عمرو اسلمی رضی اللہ عنسہ کسسو سسسیدنا عمسسر رضسسی اللسہ عنسہ نسے زکسسوۃ کسسی‬
‫وصولی کے لئے بھیجا۔ )جہاں وہ زکوۃ وصول کر رہے تھے وہاں کے( ایک شخص نے اپنی بیوی‬
‫کی لونڈی سے ازدواجی تعلقات قائم کر لئے تھے۔ حمزہ نے اس شخص کی دوسرے شسسخص‬
‫‪124‬‬

‫سے ضمانت لی اور سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے پاس آئے۔ ان ہوں ن سے اس شسسخص کسسو سسسو‬
‫کوڑے کی سزا سنائی۔ اس شخص نے جو جرم کیا تھا‪ ،‬اسے قبول کر لیا ت ھا لیکسسن ی سہ ب ھی‬
‫بتایا تھا کہ دین کا یہ حکم اس کے علم میں نہ تھا۔ اس وجہ سے حضرت عمر نے اس عذر کو‬
‫قبول کر لیا تھا۔‬

‫ام ولد س ے متعلق اصلحات‬
‫اسلم سے پہلے لونڈیوں اور ان کے بچوں کسسا معاشسسرے میسسں ب ہت پسسست مقسسام ت ھا۔‬
‫لونڈی کے بچوں کو آزاد خاتون کے بچوں کی نسبت حقیر سمجھا جاتسسا۔ ام ولسسد کسسو‬
‫بیچنے کا رواج تو عرب میں کم ہی تھا لیکن تھوڑا بہت پایا جاتا ت ھا۔ اسسسلم ن سے اس‬
‫ضمن میں یہ اصلح کی کہ بچے والی لونڈی جسے ام ولد کہا جاتسسا ہے‪ ،‬کسسی خسسدمات‬
‫کی منتقلی کو قطعی طور پر ممنوع قرار دیسسا گیسسا۔ ایسسسی لونسڈی اپنسے خاونسسد کسسی‬
‫بیوی کے ہم پلہ قرار پائی۔ اس کے بچے کا بھی معاشرے میں وہی مقام قرار پایا جو‬
‫کہ آزاد عورت کے بچے کا تھا۔‬
‫حدثنا عبد الّله بن محمد النفيلي‪ ،‬ثنا محمد بن سلمة‪ ،‬عسسن محمسسد بسسن إسسسحاق‪ ،‬عسسن‬
‫خ ّ‬
‫مه‪ ،‬عن سلمة بنسست معقسسل امسسرأة مسسن خارجسسة‬
‫طاب بن صالح مولى النصار‪ ،‬عن أ ّ‬
‫م بي عمي في الجاهلية‪ ،‬فباعني من الحباب بن عمسسرو أخسسي‬
‫قيس ع َْيلن‪ ،‬قالت‪ :‬قَد ِ َ‬
‫أبي الَيسر بن عمرو‪ ،‬فولدت له عبد الرحمن بن الحباب ثم هلك‪ ،‬فقالت امرأته‪ :‬الن‬
‫ه‪ ،‬فأتيت رسول الّله صلى الّله عليه وسلم فقلت‪ :‬يارسول الل ّسسه‪،‬‬
‫والّله تباعين في د َي ْن ِ ِ‬
‫إني امرأة من خارجة قيس عيلن قدم بي عمي المدينة فسسي الجاهليسسة‪ ،‬فبسساعني مسسن‬
‫الحباب بن عمرو أخي أبي الَيسر بن عمسسرو‪ ،‬فولسسدت لسسه عبسسد الرحمسسن بسسن الحبسساب‪،‬‬
‫فقالت امرأته‪ :‬الن والّله تباعين في د َْينه‪ ،‬فقال رسول الّله صلى الل ّسسه عليسسه وسسسلم‪:‬‬
‫ي الحباب؟" قيل‪ :‬أخوه أبو اليسر بن عمرو‪ ،‬فبعث إليه فقال‪" :‬أعتقوها‪ ،‬فِإذا‬
‫"من ول ِ ّ‬
‫ي فسسأتوني أعوضسسكم منهسسا" )ابسسو داؤد‪ ،‬کتسساب العتسسق‪ ،‬حسسديث‬
‫ق قسسدم علس ّ‬
‫سمعتم برقي ٍ‬
‫‪(3953‬‬
‫سلمہ بنت معقل بیان کرتی ہیں کہ میں خارجہ قیس عیلن سے تعلق رک ھتی ہوں اور اپن سے‬
‫چچا کے ساتھ آئی تھی۔ میرے چچا نے مجھے دور جاہلیت میں حباب بن عمرو کے ہاتھ بیچ دیا‬
‫تھا جو کہ ابی الیسر بن عمرو کے بھائی تھے۔ میرے ہاں ان سے عبسسدالرح ٰمن بسسن حبسساب کسسی‬
‫پیدائش ہوئی۔ اس کے بعد حباب فوت ہو گئے۔ ان کی بیوی کہنے لگی‪" ،‬خسسدا کسسی قسسسم اب‬
‫تو ہم اس کے قرض کی ادائیگی کے لئے تمہیں بیچیں گے۔"‬
‫میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے پاس آئی اور کہنے لگی‪" ،‬یسسا رسسسول الل سہ! میسسں‬
‫خارجۃ قیس علیان سے اپنے چچا کے ساتھ دور جاہلیت میں مدینہ آئی تھی۔ ان ہوں نسے مج ھے‬
‫حباب بن عمرو کے ہاتھ بیچ دیا تھا اور میرے بطن سے عبسسدالرح ٰمن بسسن حبسساب کسسی پیسسدائش‬
‫ہوئی ہے۔ اب ان کی بیوی کہہ رہی ہے کہ وہ ان کسسا قسسرض ادا کرن سے ک سے لئے مجھہہے بیسسچ دیسسں‬
‫گی۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬حباب کے بعد خاندان کا سرپرست کون ہے؟" کہا گیسسا‪" ،‬ان کسے ب ھائی‬
‫ابوالیسر بن عمرو۔" آپ خود ان کے پاس تشسسریف لسے گئے اور فرمایسسا‪" ،‬انہیسسں آزاد کسسر دو۔‬
‫جب بھی تم کسی غلم کے بارے میں سنو تو میرے آ جایا کرو۔ میں تمہیسسں اس کسسا معاوض سہ‬
‫دوں گا۔"‬

‫م‪ ،‬ثنا َأبو ب َك ْ‬
‫ر‪ ،‬ي َعْن ِسسي الن ّهْ َ‬
‫ن‬
‫ص‬
‫ف‪ .‬نا أ َُبو َ‬
‫س َ‬
‫عا ِ‬
‫ن ال ُ‬
‫دثنا أ َ‬
‫ح ّ‬
‫ح َ‬
‫ن َيو ُ‬
‫ح َ‬
‫شسل ِ ّ‬
‫مد ُ ب ْ ُ‬
‫ٍ‬
‫ن ابس ِ‬
‫سسي ْ ِ‬
‫ي‪ ،‬ع َس ِ‬
‫ٍ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ل اللسهِ صسسلى‬
‫سو‬
‫ر‬
‫د‬
‫ن‬
‫ع‬
‫م‬
‫هي‬
‫را‬
‫ب‬
‫إ‬
‫م‬
‫أ‬
‫ت‬
‫ر‬
‫ك‬
‫ذ‬
‫ل‪:‬‬
‫قا‬
‫س؛‬
‫با‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ا‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ة‪،‬‬
‫م‬
‫ر‬
‫ك‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ه‪،‬‬
‫الل‬
‫د‬
‫ع َب ْ ِ‬
‫ِ ِ ْ ّ َِْ ِ َ ِ ْ َ َ ُ ِ‬
‫ِ َ ْ ِ ِ َ َ َ ِ َْ ِ َّ ٍ‬
‫قا َ‬
‫ها((‪) .‬ابن ماجة‪ ،‬كتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2516‬‬
‫ل‪)) :‬أع ْت َ َ‬
‫الله عليه وسلم‪ .‬فَ َ‬
‫قَها وَل َد ُ َ‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کسے سسسامنے‬
‫ام ابراہیم )ماریہ قبطیہ رضی اللہ عنہا( کا ذکر کیا گیا۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬اس کے بچے نسے اسسے‬
‫آزاد کروا دیا ہے۔"‬

‫ري ٌ‬
‫عا َ‬
‫عي َ‬
‫ع‪ .‬ثنا َ‬
‫ن‬
‫ل‪َ ،‬‬
‫ما ِ‬
‫ل‪ :‬ثنا وَ ِ‬
‫كي ٌ‬
‫م َ‬
‫نح َ‬
‫ن إِ ْ‬
‫س َ‬
‫ح ّ‬
‫ن ُ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫مد ومحمد ب ْ ُ‬
‫ي بْ ُ‬
‫حدثنا ع َل ِ ّ‬
‫ش ِ‬
‫ن ب ْس ِ‬
‫س سي ْ ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ه‬
‫س‬
‫الل‬
‫ل‬
‫سو‬
‫س‬
‫س‬
‫ر‬
‫قال‬
‫ل‪:‬‬
‫قا‬
‫س‪:‬‬
‫با‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ا‬
‫ن‬
‫ع‬
‫مة‪،‬‬
‫ر‬
‫ك‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ع‬
‫س‪،‬‬
‫با‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ه‬
‫الل‬
‫د‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ع‬
‫ن‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ع َب ْد ِ اللهِ ب ْ ِ َ ْ ِ‬
‫َ ُ‬
‫ِ َ‬
‫ْ‬
‫ِ ْ ِ ّ ٍ‬
‫ِ ْ ِ ّ ٍ‬
‫‪125‬‬

‫َ‬
‫ه((‪) .‬ابسسن‬
‫معْت َ َ‬
‫ق ٌ‬
‫ن د ُب ُسرٍ ِ‬
‫ه ِ‬
‫من ْس ُ‬
‫ي ُ‬
‫مت ُ ُ‬
‫تأ َ‬
‫ل وَل َد َ ْ‬
‫صلى الله عليه وسلم ))أي ّ َ‬
‫ة عَ ْ‬
‫ن‪ ،‬فَهِ َ‬
‫م ُ‬
‫ما َرج ٍ‬
‫ماجة‪ ،‬كتاب العتق‪ ،‬حديث ‪ ،2515‬مشکوۃ‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(3394‬‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے فرمایسسا‪،‬‬
‫"جس شخص کے ہاں بھی کسی لونڈی سے بچہ پیدا ہو جائے‪ ،‬تو وہ اس ک سے فسسوت ہوتے ہی‬
‫آزاد ہو جائے گی۔"‬

‫ان دونوں احادیث کی سند میں اگرچہ حسین بن عبداللہ ضعیف راوی ہیں لیکن اس‬
‫حدیث کی دیگر صحیح اسناد بھی موجود ہیں۔ دارمی میں یہی حسسدیث صسسحیح سسسند‬
‫سے روایت کی گئی ہے۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے عمل سے یہ واضح ہوتا ہے کہ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کا ی ہی فرمسان ت ھا کسہ ام ولسد کسی منتقلسی کسو‬
‫مکمل طور پر روک کر اس کی آزادی پر عمل درآمد کیا جائے۔‬
‫نا عبد الله بن إسحاق بن إبراهيم البغوي نا أبو زيد بن طريف نا إبراهيم بسسن يوسسسف‬
‫الحضرمي نا الحسن بن عيسى الحنفي عسسن الحكسسم بسسن أبسسان عسسن عكرمسسة عسسن بسسن‬
‫عباس قال قال رسول الله صلى الله عليسسه وسسسلم أم الولسسد حسسرة وإن كسسان سسسقطا‪.‬‬
‫)دارقطنی‪ ،‬كتاب المکاتب‪ ،‬مسند ابن الجعد(‬
‫سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے فرمایسسا‪،‬‬
‫"ام ولد آزاد ہی ہے اگرچہ اس کا حمل ساقط ہو جائے۔"‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ام ولد کی آزادی کو بچے کے پیسسدا ہونے سسے‬
‫مشروط نہیں فرمایا بلکہ محض حمل ٹھہر جسسانے س سے مشسسروط فرمسسا دیسسا اگرچسہ وہ‬
‫حمل بعد میں ضائع بھی ہو جائے۔ یہی وجہ ہے کہ سیدنا عمر رضسسی الل سہ عن سہ ن سے اس‬
‫ضمن میں سختی سے ام ولد کی آزادی کو نافذ کیا۔‬
‫طاب َقا َ َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫مال ِ ٌ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫ما وَِليسسد َةٍ‬
‫مَر‪ ،‬أ ّ‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬أي ّ َ‬
‫ن عُ َ‬
‫ن عُ َ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫خ ّ ِ‬
‫مَر ب ْ َ‬
‫ن َنافٍِع‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن ع َب ْد ِ اللهِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ي‬
‫سي ّد ِ َ‬
‫ت ِ‬
‫ه ل ي َِبيعَُها‪ ،‬وَل ي َهَب َُها‪ ،‬وَل ي ُوَّرث َُها‪ ,‬وَهُوَ ي َ ْ‬
‫ن َ‬
‫ما َ‬
‫مت ِعُ ب َِها‪ ،‬فإ َِذا َ‬
‫ست َ ْ‬
‫ها‪ ،‬فإ ِن ّ ُ‬
‫وَلد َ ْ‬
‫ت فه ِ َ‬
‫م ْ‬
‫ة‪) .‬موطا مالک‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2248‬‬
‫حّر ٌ‬
‫ُ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ فرمایا‪ :‬جس لونڈی کے بھی اپنے آقا سے بچہ پیسسدا ہو‪ ،‬تسسو اس کسسی‬
‫خدمات کو نہ تو بیچا جائے گا‪ ،‬نہ ہی کسی کو تحفتا ً منتقل کیا جائے گسسا‪ ،‬ن سہ ہی وراثسست میسسں‬
‫منتقل کیا جائے گا۔ وہ مالک ہی اس سے فائدہ اٹھائے گا اور اس کے مرنے کے بعسسد وہ آزاد ہو‬
‫گی۔‬

‫‪126‬‬

‫باب ‪ :10‬غلموں میں‬
‫اضاف ے کا سدباب‬
‫جیسا کہ ہم بیان کر چکے ہیں کہ دور قدیم میں مختلف معاشروں میسسں نئے غلمسسوں‬
‫میں اضافے کے لئے مختلف طریقے رائج تھے جن کی تفصیل یہ ہے‪:‬‬
‫• بچوں‪ ،‬خواتین اور مردوں کو اغوا کر کے غلم بنا لیا جائے۔‬
‫• کسی آبادی پر حملہ کر کے اس کے تمام شہریوں کو غلم بنا لیا جائے۔‬
‫• کسی شخص کو اس کے کسی جرم کی پاداش میں حکومت غلم بنا دے۔‬
‫• اگر کسی کو کوئی لوارث بچہ‪ ،‬عورت یا مرد ملے تو وہ اسے غلم بنا لے۔‬
‫• قرض کی ادائیگی نہ کر سکنے کی صسسورت میسسں مقسسروض کسسو غلم بنسسا دیسسا‬
‫جائے۔‬
‫• غربت کے باعث کوئی شخص خود کو یا اپنے بیوی بچوں کو فروخت کر دے۔‬
‫• پہلے سے موجود غلموں کی اولد کو بھی غلم ہی قرار دے دیا جائے۔‬
‫• جنگ جیتنے کی صورت میں فاتحین‪ ،‬مفتوحین کو غلم بنا دیں۔‬
‫دین اسلم نسے اس ضسسمن میسسں جسسو اصسسلحات کیسسں‪ ،‬ان کسی تفصسسیل ہم السسگ السسگ‬
‫عنوانات کے تحت بیان کرتے ہیں۔ جنگی قیدیوں کی تفصیل ہم اگلے باب میسسں بیسسان‬
‫کریں گے۔‬

‫اغوا یا حمل ہ کر ک ے غلم بنا لین ے پر‬
‫پابندی‬
‫اسلم سے پہلے دنیا بھر میں یہ معمول تھا کہ مختلف قومیں اور قبائل ایسسک دوسسسرے‬
‫پر حملہ کر کے انہیں غلم بنا لیا کرتے ت ھے۔ اس کسے علوہ بسسردہ فروشسسوں کسے گسسروہ‬
‫سرگرم عمل رہتے اور بچوں وغیرہ کو اغوا کر کے انہیں غلم بنا لیتے۔ سیدنا زید بسسن‬
‫حارثہ‪ ،‬سلمان فارسی اور صہیب رومی رضی اللہ عنہم کو اسسسی طریق سے سسے اغسسوا‬
‫کر کے غلم بنا لیا گیا تھا۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے کسی بھی آزاد شخص‪ ،‬خواہ وہ بالغ مسسرد‬
‫و عورت ہو یا بچہ‪ ،‬کو اغوا کر کے غلم بنا لینے کو ایک عظیم جرم قرار دیا۔‬
‫حدثني بشر بن مرحوم‪ :‬حدثنا يحيى بن سليم‪ ،‬عن إسماعيل بن أمية‪ ،‬عن سعيد بسسن‬
‫أبي سعيد‪ ،‬عن أبي هريرة رضي الله عنه‪ ،‬عن النبي صسسلى اللسسه عليسسه وسسسلم قسسال‪:‬‬
‫)قال الله‪ :‬ثلثة أنا خصمهم يوم القيامة‪ :‬رجل أعطى بسسي ثسسم غسسدر‪ ،‬ورجسسل بسساع حسسرا‬
‫فأكل ثمنه‪ ،‬ورجل استأجر أجيسسرا فاسسستوفى منسسه ولسسم يعطسسه أجسسره( )بخسساری‪ ،‬كتسساب‬
‫البيوع‪ ،‬حديث ‪(2227‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬اللسسہ‬
‫تعالی ارشاد فرماتا ہے کہ تین افراد ایسے ہیں کہ جن کے بارے میں قیامت کے دن میسسں خسسود‬
‫‪127‬‬

‫ہی دعوی دائر کر دوں گا۔ ایک وہ شخص جس نے میرا نام لے کر وعدہ کیا اور پھر اسے توڑ‬
‫دیا۔ دوسرا وہ جس نے کسی آزاد شخص کو پکڑ کر بیچا اور اس کی قیمت کھا گیا۔ تیسسسرا‬
‫وہ شخص جس نے کسی مزدور کو کام پر رکھا‪ ،‬اس سے پسسورا کسسام ل سے لیسسا لیکسسن اس کسسی‬
‫اجرت عطا نہیں کی۔"‬

‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے ایسے شخص کی سزا ہاتھ کاٹنا مقرر کی جو بچوں کسسو‬
‫اغوا کر کے غلم بناتا ہو۔ ایک ضعیف حسسدیث میسسں رسسسول الل سہ صسسلی الل سہ علیسہ و ٰال سہ‬
‫وسلم سے بھی اسی سزا کا ذکر ملتا ہے۔ )دیکھیے‪ ،‬بیہقسسی‪ ،‬معرف سۃ السسسنن و الثسسار‪،‬‬
‫کتاب السرقۃ(‬
‫اسلم سے پہلے کے زمانے میں عرب میں جنگ و جدال عام تھا۔ بعض قبسسائل کسسا‬
‫پیشہ ہی لوٹ مار ہوا کرتا تھا۔ بدامنی کا یہ عالم تھا کسہ سسسوائے چسسار مسساہ کسے کسسسی‬
‫قافلے کا عرب کے اطراف میں سفر کرنا ہی ایک مشکل کام تھا۔ رسول اللہ صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور آپ کے خلفاء راشدین نے عرب میں ایسسسا امسن قسائم کیسا کسہ‬
‫اب اگر کوئی خاتون پورے زیورات پہن کر عرب کے ایک سرے سے دوسرے تک ب ھی‬
‫اکیلی چلی جاتی تو کوئی اس سے تعرض کرنے وال نہ تھا۔ اس امن کا نسستیجہ یسہ نکل‬
‫کہ عملی طور پر اغوا کر کے غلم بنا لینے کا خاتمہ کر دیا گیا۔‬

‫جرم کی پاداش میں غلم بنا لین ے پر‬
‫پابندی‬
‫اللہ تعالی نے قرآن مجید میں جن جرائم پر انتہائی سزائیں مقرر کی ہیسسں‪ ،‬وہ سسسب‬
‫کی سب جسمانی نوعیت کی ہیں۔ اس کسے علوہ مختلسسف جسسرائم کسسی سسسزاؤں کسسو‬
‫حکومت کی صوابدید پر چھوڑ دیا گیا ہے۔ رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم اور‬
‫خلفاء راشدین کی پوری تاریخ میں کبھی کسی جرم میسسں کسسسی ب ھی شسسخص کسسو‬
‫غلم بنا لینے کی سزا نہیں دی گئی۔ بعد کے ادوار میں بالعموم اسسسی پسسر عمسسل ر ہا‬
‫ہے۔ اس کی وجہ وہی وعید ہے کہ جو کسی آزاد کو غلم بنسسا لسے‪ ،‬اس پسسر دعسسوی اللسہ‬
‫تعالی خود قائم کرے گا۔‬

‫لوارثوں کو غلم بنا لین ے پر پابندی‬
‫اسلم میں لوارث افراد کو غلم بنا لینے کی بھی قطعی ممسسانعت کسسی گئی۔ پسسوری‬
‫امت مسلمہ میں یہ اجماعی اصول طے پا گیا کہ جس شخص یا بچے کے بارے میں یہ‬
‫علم نہ ہو سکے کہ وہ آزاد ہے یا غلم‪ ،‬اسے آزاد ہی تصور کیا جائے گا۔ اسلم سے پہلے‬
‫کے زمانے میں ایسا نہیں تھا بلکہ لوارث بچوں کے بارے میں یہ فرض کر لیا جاتا ت ھا‬
‫کہ وہ غلم ہی ہیں۔ اس اجماعی اصول پر پوری طرح عمل کیا گیا۔‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن‬
‫س ْ‬
‫ل ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن َر ُ‬
‫فَيا ُ‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬حد ّث ََنا ُ‬
‫ن عَ ْ‬
‫مس َ‬
‫جس ٍ‬
‫ن الّزهْرِيّ ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ْ‬
‫م ِ‬
‫ن ِديَنارٍ ‪ ،‬ع َ ِ‬
‫رو ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫قيطا‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬حدیث ‪(22327‬‬
‫ن ال َ‬
‫ب أع ْت َقَ ل ِ‬
‫صارِ ‪ :‬أ ّ‬
‫ن عُ َ‬
‫خطا ِ‬
‫الن ْ َ‬
‫مَر ب ْ َ‬
‫سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے لوارث بچے کو ّآزاد قرار دیا۔‬

‫ط ل َقي ً َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ه‬
‫طا فَأَتى ِبسس ِ‬
‫جل ً ال ْت َقَ َ ِ‬
‫ن ُزهَي ْرٍ ال َعَن َ ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن َر ُ‬
‫يأ ّ‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬حد ّث ََنا الع ْ َ‬
‫م ُ‬
‫س ّ‬
‫ش ‪ ،‬عَ ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ة‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬حدیث ‪(33609‬‬
‫ح َ‬
‫ع َل ِّيا ‪ ,‬فأع ْت َ َ‬
‫مئ ٍ‬
‫ه ِفي ِ‬
‫ه وَأل َ‬
‫ق ُ‬
‫ق ُ‬
‫زھیر عنسی کہتے ہیں کہ ایک شخص کو ایک بچہ پڑا ہو مل۔ اسے سیدنا علسی رضسسی اللسہ عنسہ‬
‫کے پاس لیا گیا۔ انہوں نے اسے آزاد قرار دیا اور )اس کے خرچ کی ذمہ داری کو( سو افسسراد‬
‫کے ذمے لگا دیا۔‬
‫‪128‬‬

‫موجودہ دور میں دین اسلم اور مسلمانوں کے مشہور نقاد لیوس برنارڈ لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪But Qur'anic legislation, subsequently confirmed and elaborated in the Holy Law, brought‬‬
‫‪two major changes to ancient slavery which were to have far-reaching effects. One of‬‬
‫‪these was the presumption of freedom; the other, the ban on the enslavement of free‬‬
‫‪persons except in strictly defined circumstances….. It became a fundamental principle of‬‬
‫‪Islamic jurisprudence that the natural condition, and therefore the presumed status, of‬‬
‫‪mankind was freedom, just as the basic rule concerning actions is permittedness: what is‬‬
‫& ‪not expressly forbidden is permitted; whoever is not known to be a slave is free. (Race‬‬
‫)‪Slavery in Middle East‬‬
‫قرآنی قانون نے‪ ،‬جس کی بعد میں مقدس قسانون کسی شسکل میسں توثیسق اور توضسیح کسی‬
‫گئی‪ ،‬قدیم غلمی میں دو تبدیلیاں پیدا کیں جسسس کسے اثسسرات دور رس ت ھے۔ ایسسک تسسو یسہ کسہ‬
‫آزادی کو اصول کے طور پر تسلیم کر لیا گیا۔ دوسرا یہ کہ سختی سسے متعیسسن کسسردہ حسسالت‬
‫کے علوہ آزاد افراد کو غلم بنا لئے جانے پر پابندی لگا دی گئی۔۔۔۔۔یسہ اسسسلمی فقسہ کسسا ایسسک‬
‫بنیادی اصول بن گیا کہ انسانوں کی فطری حالت‪ ،‬بنیادی طور پسسر آزادی ہی ہے۔ یسہ بالکسسل‬
‫ایسا ہی ہے کہ )اسلم میں( یہ بنیادی اصول ہے کہ جس چیز کے حرام ہونے کو بیان نہیسسں کیسسا‬
‫گیا‪ ،‬وہ جائز اور حلل ہے۔ اسی اصول پر یہ طے پایا کہ جس شسسخص کسے غلم ہونے کسسا علسسم‬
‫نہیں ہے‪ ،‬وہ آزاد ہی ہے۔‬

‫قرض کی عدم ادائیگی پر غلم بنا‬
‫لین ے پر پابندی‬
‫دور قدیم سے ہی یہ اصول چل آ رہا تھا کہ قرض کی عدم ادائیگی ک سے بسساعث کسسسی‬
‫شخص کو اس کے بیوی بچوں سمیت غلم بنا لیا جائے۔ اس ضمن میں اسلم نے نسہ‬
‫صرف یہ کہ قرض ادا نہ کر سکنے والے شخص کو غلم بنا لینے کی ممسسانعت کسسر دی‬
‫بلک سہ اس ک سے علوہ ایس سے اقسسدامات ب ھی کئے جسسن ک سے نسستیجے میسسں قسسرض دار کسسا‬
‫استحصال کرنے کی تمام صورتیں ممنوع قرار پائیں۔ ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫ْ‬
‫ش سي ْ َ‬
‫س ذ َل ِس َ‬
‫ه ال ّ‬
‫ك‬
‫ما ي َ ُ‬
‫ن الّرَبا ل ي َ ُ‬
‫ذي ي َت َ َ‬
‫ن ِ‬
‫م ال ّ ِ‬
‫ال ّ ِ‬
‫طا ُ‬
‫مو َ‬
‫ن ي َأك ُُلو َ‬
‫قو ُ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫خب ّط ُ ُ‬
‫ن إ ِل ّ ك َ َ‬
‫قو ُ‬
‫مس ّ‬
‫مس ْ‬
‫ذي َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ع َ‬
‫ح ّ‬
‫مث ْ ُ‬
‫ن‬
‫ظس ٌ‬
‫موْ ِ‬
‫ة ِ‬
‫ما ال ْب َي ْعُ ِ‬
‫ن َ‬
‫ه ال ْب َي ْعَ وَ َ‬
‫ل الّرَبا وَأ َ‬
‫حّر َ‬
‫جسساَءه ُ َ‬
‫م الّرب َسسا فَ َ‬
‫ل الل ّ ُ‬
‫م َقاُلوا إ ِن ّ َ‬
‫ب ِأن ّهُ ْ‬
‫مس ْ‬
‫مس ْ‬
‫ف وأ َمره إَلى الل ّه وم سن ع َسساد فَ سأ ُول َئ ِ َ َ‬
‫م ِفيهَسسا‬
‫حا ُ‬
‫صس َ‬
‫َ‬
‫ما َ‬
‫ب الن ّسسارِ هُس ْ‬
‫ه َ‬
‫َرب ّهِ َفانت ََهى فَل َ ُ‬
‫كأ ْ‬
‫ْ‬
‫ِ َ َ ْ‬
‫سل َ َ َ ْ ُ ُ ِ‬
‫َ‬
‫ب كُ ّ‬
‫مُنوا‬
‫ل كَ ّ‬
‫َ‬
‫ه ل يُ ِ‬
‫ن ال ّ ِ‬
‫صد ََقا ِ‬
‫فارٍ أِثيم ٍ۔ إ ِ ّ‬
‫ح ّ‬
‫م َ‬
‫دو َ‬
‫خال ِ ُ‬
‫نآ َ‬
‫ت َوالل ّ ُ‬
‫حقُ الل ّ ُ‬
‫ن۔ ي َ ْ‬
‫ه الّرَبا وَي ُْرِبي ال ّ‬
‫ذي َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‬
‫س‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ف‬
‫و‬
‫خ‬
‫ول‬
‫م‬
‫ه‬
‫ب‬
‫ر‬
‫د‬
‫ن‬
‫ع‬
‫م‬
‫ه‬
‫ر‬
‫ج‬
‫أ‬
‫م‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ة‬
‫كا‬
‫ز‬
‫ال‬
‫وا‬
‫ت‬
‫وآ‬
‫ة‬
‫صل‬
‫ال‬
‫موا‬
‫قا‬
‫أ‬
‫و‬
‫ت‬
‫حا‬
‫ل‬
‫صا‬
‫ال‬
‫لوا‬
‫م‬
‫ع‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ٌ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫وَ ِ‬
‫ّ‬
‫ِْ ْ‬
‫ُ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ُ ْ ْ ُ ْ ْ َ َ ِّ ْ َ‬
‫َ َ ْ‬
‫ّ َ ِ َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫ن ُ‬
‫ن۔‬
‫مُنوا ات ّ ُ‬
‫مسؤ ْ ِ‬
‫ي ِ‬
‫ما ب َ ِ‬
‫ن۔ َيا أي َّها ال ِ‬
‫ن الّرَبا إ ِ ْ‬
‫حَزُنو َ‬
‫م يَ ْ‬
‫م ُ‬
‫كنت ُ ْ‬
‫ه وَذ َُروا َ‬
‫قوا الل َ‬
‫نآ َ‬
‫َول هُ ْ‬
‫مِني َ‬
‫م ْ‬
‫ق َ‬
‫ذي َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫مل‬
‫م تَ ْ‬
‫ب ِ‬
‫سسسول ِهِ وَإ ِ ْ‬
‫فعَلوا فَسأذ َُنوا ب ِ َ‬
‫فَإ ِ ْ‬
‫ن اللسهِ وََر ُ‬
‫وال ِك ْ‬
‫سأ ْ‬
‫م فَلكس ْ‬
‫ن ت ُب ْت ُس ْ‬
‫ن لَ ْ‬
‫م ُرُءو ُ‬
‫حسْر ٍ‬
‫مس َ‬
‫مس ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ن۔ )البقرة ‪(279-2:275‬‬
‫مو َ‬
‫مو َ‬
‫ن َول ت ُظل ُ‬
‫ت َظ ْل ِ ُ‬

‫جو لوگ سود کھاتے ہیں وہ )قبروں سے( اس طرح )حواس باختہ( اٹھیں گے جیسے کسی کو‬
‫جن نے لپٹ کر دیوانہ بنا دیا ہو۔ یہ )سزا( اس لئے ہو گی کہ وہ کہتے ہیں کہ تجسسارت کرنسسا ب ھی‬
‫تو )نفع کے لحاظ سے( ویسا ہی ہے جیسے سود )لینا( حالنکہ تجارت کو اللہ نے حلل کیسسا ہے‬
‫اور سود کو حرام۔ تو جس شخص کے پاس اللہ کی نصیحت پہنچی اور وہ )سود لینسسے س سے(‬
‫باز آگیا تو جو پہلے ہوچکا وہ اس کا ہے اور )قیامت میں( اس کا معاملہ اللہ کے سپرد ہو گسسا۔‬
‫اور جس نے دوبارہ سود لینا شروع کر دیا تو ایسے لوگ جہنمی ہیں اور وہ ہمیشہ جہنسسم میسسں‬
‫)جلتے( رہیں گے۔‬
‫اللہ سود کو نیست و نابود )یعنی بےبرکت( کرتا ہے اور خیرات )کی برکت( کو بڑھاتا ہے اور‬
‫اللہ کسی ناشکرے گنہگار کو دوست نہیں رکھتا۔ جو لوگ ایمان لئے اور نیک عمل کرت سے اور‬
‫نماز پڑھتے اور زکوۃ دیتے رہے ان کو ان کے کاموں کا صلہ اللہ کے ہاں ملے گا اور )قیامت کے‬
‫دن( ان کو نہ کچھ خوف ہوا اور نہ وہ غمناک ہوں گے۔‬
‫مومنو! اللہ سے ڈرو اور اگر ایمان رکھتے ہو تو جتنا سود باقی رہ گیسسا ہے اس کسسو چ ھوڑ دو۔‬
‫‪129‬‬

‫اگر ایسا نہ کرو گے تو تمہیں خبردار کیا جاتا ہے )کہ تم( اللہ اور رسول سے جنسسگ کرنسے کسے‬
‫لئے تیار ہو جاؤ۔ اگر تم توبہ کرلو گے )اور سود چھوڑ دو گے( تو تم کو اپنی اصسسل رقسسم لینسے‬
‫کا حق ہے۔ نہ تم کسی پر ظلم کرو اور نہ ہی کوئی تم پر ظلم کرے۔‬

‫قرآن مجید نے سود لینے والوں کے لئے نہ صرف آخرت کے عذاب کسسی وعیسسد سسسنائی‬
‫بلکہ یہ بھی بتا دیا کہ اگر وہ سود لینے کو ترک نہ کریں گے تسسو پ ھر انہیسسں رسسسول اللسہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‪ ،‬جنہیں اللہ کی مدد حاصل ہو گی‪ ،‬س سے جنسسگ ک سے لئے تیسسار‬
‫رہنا پڑے گا۔ اس جنگ کی نوبت اس لئے نہ آئی کہ مسلمانوں نے اپن سے درمیسسان سسسود‬
‫کا مکمل خاتمہ کر دیا تھا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم نسے حجسۃ السوداع کسے‬
‫موقع پر یہ مثال قائم فرمائی کہ آپ کے چچا سیدنا عباس رضی اللہ عن سہ کسسا سسسودی‬
‫قرضہ بہت سے لوگوں کے ذمہ واجب الدا تھا‪ ،‬آپ نے اس پسسورے کسے پسسورے سسسود کسسو‬
‫معاف فرما دیا۔‬
‫قرآن مجید نے یہ حکم دیا کہ اگر قرض دار تنگ دست ہو تو اصل زر کی وصولی‬
‫کے لئے بھی اسے مہلت دی جائے اور بہتر یہی ہے اس اصل قرض کو بھی معساف کسسر‬
‫دیا جائے۔‬
‫َ‬
‫ن ُ‬
‫ن َ‬
‫ن۔‬
‫صسد ُّقوا َ‬
‫مسسو َ‬
‫م إِ ْ‬
‫سسَرةٍ وَأ ْ‬
‫كا َ‬
‫وَإ ِ ْ‬
‫مي ْ َ‬
‫ن ُذو ع ُ ْ‬
‫م ت َعْل َ ُ‬
‫كنت ُس ْ‬
‫خي ْسٌر ل َك ُس ْ‬
‫سسَرةٍ فَن َظ ِسَرة ٌ إ ِل َسسى َ‬
‫ن تَ َ‬
‫)البقرة ‪(2:280‬‬
‫اور اگر قرض لینے وال تنگ دست ہو تو )اسے( آسانی کے حاصل ہونے تک مہلست دو اور اگسر‬
‫)اصل زر( معاف ہی کر دو توتمہارے لئے یہ زیادہ اچھا ہے اگر تم اس بات کو سمجھتے ہو۔‬

‫بعد میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نسے تنسسگ دسسست مقروضسسوں کسے لئے یسہ‬
‫حکم جاری فرمایا کہ اگر کوئی شخص اپنا قرض ادا نہ کر سسسکے تسسو اس کسے قسسرض‬
‫کی ادائیگی حکومت کے ذمہ ہو گی۔‬
‫حدثني محمد بن رافع‪ .‬حدثنا شبابة‪ .‬قال‪ :‬حدثني ورقاء عن أبي الزناد‪ ،‬عسسن العسسرج‪،‬‬
‫عن أبي هريرة‪ ،‬عن النبي صلى الله عليه وسلم‪ ،‬قال )والذي نفس محمسسد بيسسده! إن‬
‫على الرض من مؤمن إل أنا أولى الناس به‪ .‬فأيكم ما ترك دينا أو ضياعا فأنا مسسوله‪.‬‬
‫وأيكم ترك مال فإلى العصبة من كان(۔ )مسلم‪ ،‬كتاب الفرائض‪ ،‬حديث ‪(4517‬‬
‫سیدنا ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬اس‬
‫کی قسم جس کے قبضے میں محمد کی جان ہے! روئے زمین پر کوئی ایسسسا مسسسلمان نہیسسں‬
‫جس سے میرا قریب ترین تعلق نہ ہو۔ تم میں سے جو شخص کے ذمے قسسرض یسسا اور کسسوئی‬
‫ادائیگی ہو اور وہ فوت ہو جائے تو میں اس کا ذمہ دار ہوں۔ تسسم میسسں سسے اگسسر کسسوئی مسسال‬
‫چھوڑ کر مرے تو وہ اس کے وارثوں کا ہے۔"‬

‫ان اصلحات کے نتیجے میں قرض کی عدم ادائیگسسی کسی صسسورت میسسں غلم بنسسا لئے‬
‫جانے کا مکمل خاتمہ ہو گیا۔‬

‫غربت ک ے باعث اپنی ذات یا اولد کو‬
‫فروخت کرن ے پر پابندی‬
‫دنیا کے بہت سے حصوں میں لوگ غربت ک سے بسساعث اپن سے آپ کسسو یسسا اپنسسی اولد کسسو‬
‫فروخت کر دیا کرتے تھے اور اب بھی ایسا کرتے ہیں۔ دین اسلم میں ایسے لوگسسوں‬
‫کو خریدنے کی اجازت نہیں دی گئی اور نہ ہی صحابہ کرام رضی اللہ عنہم ن سے کب ھی‬
‫ایس سے شسسخص کسسو خریسسدا ہے۔ مسسسلمان معاشسسرے کسسو بسسالعموم اور حکسسومت کسسو‬
‫بالخصوص ایسے لوگوں کی مدد کرنے کا حکم دیا گیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ‬
‫وسلم نے اپنے معاشسسرے میسں غربست کسے خساتمے کسے لئے جسسو اقسدامات کئے ان کسی‬
‫‪130‬‬

‫تفصیل ہم "نیم غلمی سے متعلق اصلحات" کے تحت تفصسسیل س سے بیسسان کسسر چک سے‬
‫ہیں۔‬
‫ان تفصیلت کا خلصہ یہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم ن سے زکسسوۃ کسسا‬
‫نظام قائم فرمایا جس کا بنیادی مقصد غربت کا خاتمہ ہی تھا۔ آپ نے زمینسسوں کسسی‬
‫آباد کاری پر بھرپور توجہ دی اور جو لوگ زمین سے محروم تھے‪ ،‬انہیں زمینیں عطسسا‬
‫کیں تاکہ وہ انہیں آباد کر کے اپنی مسسالی حسسالت ب ہتر بنسسا سسسکیں۔ اس ضسسمن میسسں یسہ‬
‫شرط رکھی گئی کہ اگر کوئی شخص اپنی زمین کے جتنے حصے کو آباد نہ کسسر سسسکا‬
‫تو اس کی فالتو زمین اس سے لے کر کسی اور ضرورت مند کو دے دی جائے گسسی۔‬
‫زمیندار اور مزارعوں سے متعلق ہر قسم کی استحصالی شرائط سے منع فرما دیا‬
‫گیا۔‬
‫ان اصلحات کا نتیجہ یہ نکل کہ اسلمی حکومت میں غربت کسسا تقریب سا ً خسساتمہ ہو‬
‫گیا۔ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے زمانے میں تو یہ مشہور ہے کہ لوگ خیرات کی رقم‬
‫لے کر ان افراد کو ڈھونڈتے تھے جو اسے قبول کرنے پر تیار ہوں لیکسسن اس رقسسم کسسو‬
‫قبول کرنے وال بڑی مشکل سے ہی مل کرتا تھا۔ اس طریقے سے وہ وجسہ ہی سسسرے‬
‫سے ختم کر دی گئی جس کے باعث کوئی اپنی ذات یا اولد کسسو فروخسست کرن سے پسسر‬
‫تیار ہوتا تھا۔ لوئیس برنارڈ اس ضمن میں لکھتے ہیں۔‬
‫‪The enslavement of free Muslims was soon discouraged and eventually prohibited. It was‬‬
‫‪made unlawful for a freeman to sell himself or his children into slavery, and it was no‬‬
‫‪longer permitted for freemen to be enslaved for either debt or crime, as was usual in the‬‬
‫‪Roman world and, despite attempts at reform, in parts of Christian Europe until at least the‬‬
‫)‪sixteenth century. (Race & Slavery in Middle East‬‬
‫آزاد مسلمانوں کو غلم بنائے جانے کی حوصلہ شکنی کی گئی اور بالخر اسے مکمسسل طسسور‬
‫پر ممنوع قرار دے دیا گیا۔ یہ بات خلف قانون قرار دی گئی کہ کسسوئی شسسخص اپنسسی ذات یسسا‬
‫اولد کو بطور غلم فروخت کر سکے۔ اس بات کی اجازت بھی ختم کسسر دی گئی کسہ کسسسی‬
‫آزاد شخص کو قرض کی عدم ادائیگی یا کسی جرم کی پسساداش میسسں غلم بنایسسا جسسائے گسسا۔‬
‫)غلم بنانے کے یہ تمام طریق ہائے کار( رومی دنیسا میسسں عسام ت ھے اور اصسلح کسی تمسام تسر‬
‫کوششوں کے باوجود عیسائی دنیا میں یہ طریق ہائے کار سولہویں صدی تک چلتے رہے ہیں۔‬

‫غلموں کی آئند ہ آن ے والی نسلوں‬
‫کی آزادی‬
‫دنیا بھر میں یہ دستور رائج تھا کہ غلموں کی آئندہ نسلیں ب ھی غلم ہوں گسی۔ دنیسسا‬
‫کے تمام خطوں میں غلموں کو عام طور پر شادی کی اجازت بھی اسی وجسہ سسے‬
‫دی جاتی تھی کہ اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والے بچے غلموں کی فوج میں اضسسافہ‬
‫کر سکیں گے۔ لونڈیوں سے عصمت فروشی کروانے کا مالکوں کو ایک فائدہ یہ ب ھی‬
‫تھا کہ اس کے نتیجے میں ان کے پاس لونڈیوں کی ناجائز اولد کی صورت میں مزید‬
‫غلم میسر آ جاتے۔ ان غلموں کا کوئی متعین باپ بھی نہ ہوا کرتا جو ان کی آزادی‬
‫کی کوشش کر سکتا۔‬
‫ظہور اسلم کے وقت غلموں کی اولد کی جو اقسام دور جاہلیت سے چلسسی آ ر ہی‬
‫تھیں‪ ،‬وہ یہ تھیں‪:‬‬
‫• آقاؤں کے اپنی لونڈیوں سے پیدا ہونے والے بچے‬
‫• آزاد خواتین کے غلم شوہروں سے پیدا ہونے والے بچے‬
‫‪131‬‬

‫• لونڈیوں کے اپنے آزاد خاوندوں سے پیدا ہونے والے بچے‬
‫• غلم باپ اور کنیز ماں کے بچے‬

‫آقاؤں کی اپنی لون ڈیوں س ے اولد‬
‫دور جاہلیت میں ان میں سے ہر قسم کے بچوں کو بسسالعموم غلم ہی سسسمجھا جاتسسا‬
‫تھا۔ ان میں سے ان بچوں کی حالت نسبتا ً بہتر تھی جو آقا اور لونڈی ک سے ازدواجسسی‬
‫تعلق کے نتیجے میں پیدا ہوئے ہوں لیکن ی سہ ب ھی اپن سے ان سسسوتیلے ب ہن ب ھائیوں کسسی‬
‫نسبت کمتر درجے کے حامل ہوا کرتے تھے جو ان کے بسساپ اور ایسسک آزاد عسسورت ک سے‬
‫ازدواجی تعلق کے نتیجے میں پیدا ہوئے ہوں۔ ان بچوں کے حقسسوق وراثسست وغیسسرہ کسے‬
‫معاملت میں اپنے آزاد بہن بھائیوں کی نسبت نہ ہونے کے برابر تھے۔‬
‫اسلم نے ان بچوں سے متعلق جو اصلحات کیں‪ ،‬ان کے مطابق آقسسا اور لونسسڈی‬
‫کے تعلق سے پیدا ہونے والے بچسسوں کسسو مکمسسل طسسور پسسر آزاد اور اپن سے سسسوتیلے ب ہن‬
‫بھائیوں کے ہم پلہ قرار دیا۔ انہیں وراثت میں بھی وہی حقوق دیے گئے جو ان کے بہن‬
‫بھائیوں کو حاصل تھے۔ نہ صرف اولد بلکہ اس اولد کی کنیز ماں کے خود بخود آزاد‬
‫ہو جانے کا قانون بنا دیا گیا جس کی تفصیل ہم "ام ولد" کے عنوان ک سے تحسست بیسسان‬
‫کر چکے ہیں۔‬

‫آزاد ماں اور غلم باپ کی اولد‬
‫بالکل یہی معاملہ ان بچوں کے ساتھ کیا گیا جسسن کسسا بسساپ غلم اور مسساں آزاد ہو۔ ان‬
‫بچوں کو بھی مکمل طور پر آزاد قرار دے دیا گیا۔‬
‫حدثنا يعلى عن العمش عن إبراهيم قال قال عمر المملوك يكون تحته الحرة يعتسسق‬
‫الولد بعتق أمه فإذا عتق الب جر الولء‪) .‬دارمی‪ ،‬کتاب الفرائض‪ ،‬حدیث ‪(3170‬‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا‪" ،‬غلم باپ اور آزاد خاتون کے بچ سے اپنسسی مسساں ک سے آزاد‬
‫ہونے کے باعث آزاد ہی ہوں گے۔ جب ان کا باپ آزاد ہو گا تو )ان بچسسوں کسسی( ولء کسسا رشسستہ‬
‫)باپ کے سابقہ مالک( سے قائم ہو جائے گا۔"‬

‫ابن تیمیہ‪ ،‬امام احمد بن حنبل کا یہ نقطہ نظر بیان کرت سے ہیسسں ک سہ آزاد مسساں اور غلم‬
‫باپ کے بچے بھی آزاد ہی ہوں گے۔‬
‫قال أحمد ‪ :‬إذا تزوج العبد حرة عتق نصفه ‪ .‬ومعنى هذا ‪ ،‬أن أولده يكونسسون أحسسرارا ً‬
‫وهم فرعه ‪ ،‬فالصل عبد وفرعه حر والفرع جسسزء مسسن الصسسل ‪) .‬ابسسن تیمی سہ‪ ،‬السیاس سۃ‬
‫الشرعیۃ فی اصلح الراعی و الرعیۃ(‬
‫احمد بن حنبل کہتے ہیں‪" ،‬جب کوئی غلم کسی آزاد خاتون سسے شسادی کسر لسے تسو اس کسا‬
‫نصف آزاد ہو گیا۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ اس غلم کی اولد آزاد ہو گئی کیونکہ وہ اسی کسسی‬
‫ایک شاخ ہے۔ تنا تو غلم ہے لیکن شاخیں آزاد ہیں اور شاخ تو تنے کا ایک حصہ ہی ہے۔"‬

‫آزاد باپ اور غلم ماں کی اولد‬
‫ایسے بچے جن کی ماں غلم اور باپ آزاد ہو تسسو ان ک سے ضسسمن میسسں کسسوئی مرفسسوع‬
‫حدیث ہمیں نہیں مل سکی۔ اس کی وجہ بنیادی طور پر یہ رہی ہو گی کہ ایسا کوئی‬
‫مقدمہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی خدمت میں پیش ہی نہ ہوا ہو گا۔ اول‬
‫تو ایسے جوڑوں کی تعداد ہی بہت کم تھی جسسن میسسں آزاد مسسردوں نسے غلم خسسواتین‬
‫سے نکاح کی ہو کیونکہ لونڈیوں کی اخلقی حالت کے بسساعث ان سسے آزاد مسسرد ب ہت‬
‫کم نکاح کیا کرتے تھے۔ دوسرے یہ کہ جو ایسے جوڑے ہوں گسے ب ھی‪ ،‬ان ہوں نسے اپنسے‬
‫‪132‬‬

‫مالکان کو بچوں کی آزادی پر راضی کر لیا ہو گا اور عدالت میں مقدمے کی نسسوبت‬
‫ہی نہ آئی ہو گی۔‬
‫سیدنا عمر یا عثمان رضی اللہ عنہما کے دور میں ایک ایسا مقدمہ پیش کیسسا گیسسا‬
‫جس میں ایک لونڈی نے جھوٹ بول کر خود کو آزاد عورت ظاہر کر ک سے شسسادی کسسر‬
‫لی۔ اس مقدمے میں خلیفہ وقت نے ان بچوں کے آزاد باپ کو حکم دیا کہ وہ فدیہ ادا‬
‫کر کے اپنے بچوں کو آزاد کروا لے۔ )موطسساء مالسسک‪ ،‬کتسساب القضسسیۃ‪ ،‬حسسدیث ‪(2160‬۔‬
‫ایک اور مقدمہ سیدنا عبداللہ بن مسعود یا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہم ک سے پسساس‬
‫پیش کیا گیا تو انہوں نے ایسے بچوں کو غلم بنانے سے منسسع فرمسا دیسسا۔ سسسیدنا عمسسر‬
‫رضی اللہ عنہ نے بھی ایسا ہی ایک فیصلہ کیا‪:‬‬
‫قال )احمد(‪ :‬و اخبرنا ثقہ عن ابن ابی ذئب‪ ،‬عن الزھری‪ ،‬عن سسعید بسسن المسسسیب‪ ،‬ان عمسسر‬
‫بن الخطاب کان یقضی فی العرب الذین ینکحون الماء بالفداء بالغرۃ۔ )بیہقی‪ ،‬معرفۃ السسسنن‬
‫والثار‪ ،‬کتاب السیر‪ ،‬حدیث ‪(17964‬‬

‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے ایسے عربوں سے جو لونڈیوں سے نکاح کر لیتے تھے‪) ،‬کسسی اولد‬
‫کے بارے میں( یہ فیصلہ کیا کہ وہ فدیہ ادا کر کے )اپنی اولد کو آزاد کروا سکتے ہیں۔(‬

‫ف‪،‬‬
‫س ْ‬
‫م َ‬
‫ن ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫حن َس ِ‬
‫ن ال َ ْ‬
‫فَيا َ‬
‫َ‬
‫م ْ‬
‫ن َ‬
‫سعَرٍ وَ ُ‬
‫م ْ‬
‫ن ال ْ ُ‬
‫سل َ َ‬
‫ن ك ُهَي ْ ٍ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ْ‬
‫كيعٌ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ست َوْرِد ِ ب ْس ِ‬
‫ل ‪ ،‬عَ ِ‬
‫ة بْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ٌ‬
‫َ‬
‫ق‬
‫جل إلى ع َب ْد ِ اللهِ ف َ‬
‫س ست َرِ ّ‬
‫ري سد ُ أ ْ‬
‫مي َزوّ َ‬
‫قال ‪ :‬إ ّ‬
‫جاَء َر ُ‬
‫َقال ‪َ :‬‬
‫ن يَ ْ‬
‫جن ِسسي وَِلي سد َت َ ُ‬
‫ن عَ ّ‬
‫ه وَهُ سوَ ي ُ ِ‬
‫ه ذ َل ِ َ‬
‫دي ‪َ ،‬قا َ‬
‫ك‪) .‬مصنف ابن ابی شيبة؛ حديث ‪(21277‬‬
‫وَل َ ِ‬
‫س لَ ُ‬
‫ل ‪ :‬ل َي ْ َ‬
‫ایک شخص عبداللہ رضی اللہ عنہ کے پاس آیا اور کہنے لگا‪ ،‬میسسرے چچسسا نسے اپنسسی لونسڈی کسسی‬
‫شادی مجھ سے کر دی تھی۔ اب وہ میری اولد کو اپنا غلم بنانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے فرمایا‪،‬‬
‫"اس ایسا کوئی حق حاصل نہیں ہے۔"‬

‫ابن کثیر نے امام شافعی کا ایک نقطہ نظر یہ درج کیا ہے کہ ماں یا باپ میں سے اگر‬
‫ایک بھی آزاد ہو تو ان کے بچے بھی آزاد ہی تصسسور کئے جسسائیں گ سے۔ )تفسسسیر سسسورۃ‬
‫نساء ‪(4:25‬‬

‫غلم ماں اور غلم باپ کی اولد‬
‫وہ بچے جن کے ماں اور باپ دونوں ہی غلم ہوں‪ ،‬ان کے بارے میں بھی ہمیں رسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی کوئی حدیث نہیں مل سکی۔ تفسیر و فقہ کی کتب‬
‫میں یہ بیان کیا گیا ہے کہ وہ اپنے والدین کے تابع ہی ہوں گے۔ جب تک ان ک سے والسسدین‬
‫غلم رہیں گے‪ ،‬یہ بچے بھی غلم ہی تصور کئے جائیں گ سے اور جسسب والسسدین آزاد ہوں‬
‫گے یا ان میں سے کوئی مکاتبت کرے گا تو یہ بچے خود بخود ان کے ساتھ ہی آزاد ہو‬
‫جائیں گے۔‬
‫ُ‬
‫مسَر ‪َ ،‬قسا َ‬
‫ن َنسافٍِع ‪َ ،‬‬
‫مسرِيّ ‪َ ،‬‬
‫مْهسد ِيّ ‪َ ،‬‬
‫م ال ْوََلسدِ‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬وََلسد ُ أ ّ‬
‫ن عُ َ‬
‫ن ال ْعُ َ‬
‫ن َ‬
‫عس ْ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫ن اْبس ِ‬
‫عس ِ‬
‫عس ِ‬
‫من ْزِل َت َِها‪) .‬مصنف ابن ابی شيبة؛ حديث ‪(21000‬‬
‫بِ َ‬
‫نافع کہتے ہیں کہ سیدنا ابن عمر رضی اللہ عنہما نے فرمایا‪" ،‬لونڈی کی )اپنے مالک کسسے علوہ‬
‫کسی اور شوہر کی اولد( اپنی ماں کے درجے پر ہے )یعنی وہ ماں کے ساتھ ہی آزاد ہو جائے‬
‫گی۔(‬

‫عسن إبراهيسم ؛ فسي الرجسل يسزو ُ‬
‫م وََلسد ِهِ‬
‫ِ‬
‫ّ ُ ِ ُ َ ّ ُ‬
‫ن َ‬
‫َ‬
‫جأ ّ‬
‫حد ّث ََنا ع َب ْد ُ ال ّ‬
‫مِغيَرةَ ‪َ ِ َ ْ ْ َ ،‬‬
‫ن ُ‬
‫حْر ٍ‬
‫ب ‪ ،‬عَ ْ‬
‫سل َم ِ ب ْ ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن ب ِرِقَّهسا ‪َ ،‬فسإ َِذا‬
‫قسو‬
‫ر‬
‫ي‬
‫و‬
‫هسا‬
‫ق‬
‫ت‬
‫ع‬
‫ب‬
‫ن‬
‫قسو‬
‫ُ‬
‫ت‬
‫ع‬
‫ي‬
‫‪،‬‬
‫م‬
‫هس‬
‫م‬
‫أ‬
‫ة‬
‫ل‬
‫ز‬
‫ن‬
‫م‬
‫ب‬
‫م‬
‫ه‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫دا‬
‫ل‬
‫و‬
‫أ‬
‫ه‬
‫ل‬
‫د‬
‫ل‬
‫ت‬
‫ف‬
‫ه‬
‫د‬
‫ب‬
‫ع‬
‫ُ ْ ِ َ ْ ِ ِ ّ ِ ْ َْ ِ‬
‫َ‬
‫َْ َ ُ َِ ُ ُ ْ ً‬
‫َ ِِْ ِ َ ََُ‬
‫قوا‪) .‬مصنف ابن ابی شيبة؛ حديث ‪(20996‬‬
‫م ع َت َ ُ‬
‫ت َ‬
‫سي ّد ُهُ ْ‬
‫ما َ‬
‫َ‬
‫)تابعی عالم( ابراہیم نخعی نے ایسی صورت کے بارے میں فتوی دیا جس میں ایسسک شسسخص‬
‫نے اپنی ام ولد کی شادی اپنے غلم سے کر دی ت ھی اور پ ھر اس غلم میسسں س سے اس کسسی‬
‫اولد بھی پیدا ہو گئی تھی۔ انہوں نے کہا‪" ،‬وہ اپنی ماں کے درج سے پسسر ہوں گ سے۔ جسسب تسسک وہ‬
‫غلمی کی حالت میں رہے گی‪ ،‬یہ بھی غلم رہیں گے اور جب وہ مکمل آزاد ہو جائے گی تو یہ‬
‫‪133‬‬

‫بھی آزاد ہو جائیں گے۔ جب ماں کا آقا فوت ہو گا تو یہ سب کے سب آزاد ہو جائیں گے۔"‬

‫اس معاملے میں بھی کسی مرفوع حدیث کے نہ پائے جانے کا سبب بنیادی طسسور پسسر‬
‫یہی ہے کہ ایسا کوئی واقعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم ک سے دور میسسں پیسسش‬
‫نہیں آیا جس میں کسی غلم یا لونڈی کے مالک نے ان کے بچوں کسسو آزاد کرنسے سسے‬
‫انکار کیا ہو۔ یہی وجہ ہے کہ عام طور پر اس اصول کو مان لیا گیا ہے کہ غلمسسوں کسے‬
‫نابالغ بچے اپنے والدین کے تابع ہی ہوں گے۔ اگر ان بچوں کے بالغ ہونے سسے پہلسے ان‬
‫کے والدین آزاد نہیں ہو پاتے‪ ،‬جس کا امکان عہد رسالت میں بہت ہی کم تھا‪ ،‬تسسو ان‬
‫بچوں کو خود یہ اختیار حاصل ہو جائے گا کہ یہ مکاتبت کے ذریع سے اپنسسی آزادی خریسسد‬
‫سکیں۔‬
‫غلموں کے بچوں کو اپنے والدین کی حالت پر برقرار رکھنے کی وجہ یہ ت ھی کسسہ‬
‫اگر انہیں پیدائش کے وقت سے ہی آزاد کر دیا جاتا تو ان کی کفالت کسسا مسسسئلہ پیسسدا‬
‫ہو جاتا۔ ان بچوں کی کفالت ان کے والدین کی کفالت کسے سسساتھ سسساتھ والسسدین کسے‬
‫آقاؤں کے ذمہ تھی۔ اگر ان بچوں کو پیدائش کے وقت ہی آزاد قرار دے دیسسا جاتسسا تسسو‬
‫پھر ان کی کفالت کی ذمہ داری ان کے والدین کے آقاؤں پر کیسے عائد کسسی جسساتی؟‬
‫یہی وجہ ہے کہ انہیں اپنے والدین کے تابع ہی رہنے دیا گیا اور بالغ ہونے پسسر اپنسسی آزادی‬
‫خریدنے کا حق انہیں دے دیا گیا۔‬

‫‪134‬‬

‫باب ‪ :11‬جنگی قیدیوں س ے‬
‫متعلق خصوصی اصلحات‬
‫اسلم میں جنگی قیدیوں س ے متعلق‬
‫احکام‬
‫جنگی قیدیوں ک ے سات ھ برتاؤ‬
‫دین اسلم سے پہلے یہ رواج چل آ رہا تھا کہ جنگ کی صسسورت میسسں فاتسسح مفتسسوح کسے‬
‫تمام جنگی قیدیوں کو غلم بنسسا لیسسا کرتسسا ت ھا اور اس سسے ن ہایت ہی غیسسر انسسسانی‬
‫سلوک کیا کرتا تھا۔ نہ صرف فوجیوں کو بلکہ ان کے ساتھ ساتھ مفتسسوحہ ممالسسک کسے‬
‫عام لوگوں کو بھی غلم بنا لیا جاتا تھا۔ بین القوامی قانون کے تحت‪1950 ،‬ء میسسں‬
‫جنیوا کنونشن کے نافذ ہونے تک یہ سلوک جائز اور درست سسسمجھا جاتسسا ت ھا۔ جنیسسوا‬
‫کنونشن سے تیرہ سو برس پہلے ہی قرآن مجید نے رسسول اللسہ صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم کی مکی زندگی ہی میں جنگی قیدیوں سے انسانی سلوک کرنے کسسی تلقیسسن‬
‫فرمائی۔‬
‫َ‬
‫ما وَأ ِ‬
‫س ِ‬
‫حب ّهِ ِ‬
‫ري سد ُ‬
‫م ل ِسوَ ْ‬
‫م ع ََلى ُ‬
‫مو َ‬
‫ن الط َّعا َ‬
‫م ْ‬
‫مك ُس ْ‬
‫ما ن ُط ْعِ ُ‬
‫سيًرا۔ إ ِن ّ َ‬
‫كيًنا وَي َِتي ً‬
‫وَي ُط ْعِ ُ‬
‫جهِ الل ّسهِ َل ن ُ ِ‬
‫ش ُ‬
‫جَزاء وََل ُ‬
‫كوًرا۔ )الدهر ‪(9-76:8‬‬
‫ِ‬
‫م َ‬
‫منك ُ ْ‬
‫)نیک لوگ وہ ہیں جو( اللہ کی محبت میں مسکین‪ ،‬یتیم اور قیدی کو کھانسسا کھلتسے ہیسسں۔ اور‬
‫کہتے ہیں کہ ہم تو تمہیں صرف اللہ کی رضسا کسے لئے کھانسا کھلتسے ہیسسں۔ ہم اس پسسر تم ہاری‬
‫طرف سے کسی اجر یا شکر گزاری کے طالب بھی نہیں ہیں۔‬

‫مسلمانوں کی پہلی باقاعدہ جنگ‪ ،‬جنگ بدر کے موقع پر جنگی قیدیوں سے متعلق یہ‬
‫قانون بیان کر دیا گیا۔ ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫م فَ ُ‬
‫من ّسسا‬
‫ن كَ َ‬
‫حّتى إ َِذا أ َث ْ َ‬
‫م ال ّ ِ‬
‫فَِإذا ل َ ِ‬
‫شس ّ‬
‫ب َ‬
‫ضْر َ‬
‫فُروا فَ َ‬
‫مسسا َ‬
‫دوا ال ْوَث َسساقَ فَإ ِ ّ‬
‫موهُ ْ‬
‫خنت ُ ُ‬
‫قيت ُ ُ‬
‫ب الّرَقا ِ‬
‫ذي َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ها۔ )محمد ‪(47:4‬‬
‫ب أوَْزاَر َ‬
‫حْر ُ‬
‫ضعَ ال َ‬
‫حّتى ت َ َ‬
‫داء َ‬
‫ما فِ َ‬
‫ب َعْد ُ وَإ ِ ّ‬
‫جب تمہارا انکار کرنے والوں سے مقابلہ ہو تو ان کی گردنوں پسسر ضسسرب لگسساؤ‪ ،‬ی ہاں تسسک کسہ‬
‫جب تم انہیں قتل )کر کے شکست دے( چکو تو انہیں مضبوطی سے باندھ لو۔ )اس کسسے بعسسد‬
‫ان جنگی قیدیوں کو( بطور احسان رہا کر دو یا پھر فدیہ لے کسسر چ ھوڑ دو۔ ی سہ سسسب معسساملہ‬
‫اس وقت تک ہو جب تک لڑنے والے اپنے ہتھیار نہ رکھ دیں۔‬

‫اس آیت میں جنگی قیدیوں کے ساتھ دو ہی معاملت کرنے کا حکم دیا گیا۔ ایسسک تسسو‬
‫یہ کہ انہیں بطور احسان رہا کر دیا جائے اور دوسرے یہ کہ انہیں فدیہ لے کر چ ھوڑ دیسسا‬
‫جائے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی تمام جنگوں کا اگر تفصیل سے جائزہ‬
‫لیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ اس دور کے بین القوامی جنگی قسسانون کسے تحسست بسسسا‬
‫اوقات دشمن کے جنگی قیدیوں کو غلم بنایا گیا لیکن رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ‬
‫وسلم نے ذاتی طور پر کوشش کر کے انہیں غلمی س سے نجسسات دلئی۔ بسسسا اوقسسات‬
‫آپ نے خود فدیہ ادا کر کے دشمن کے جنگی قیدیوں کو رہائی عطسسا فرمسسائی۔ بعسسض‬
‫اوقسات آپ نسے دشسسمن ہی کسی کسسسی خساتون سسے سسسسرالی رشسستہ قسائم کسسر کسے‬
‫‪135‬‬

‫مسلمانوں کو اس بات کی ترغیب دی کہ وہ ان جنگی قیدیوں کسسو آزاد کسسر دیسسں اور‬
‫بعض اوقات آپ نے ذاتی طور پر ترغیب دل کر ان قیدیوں کو غلمی سے بچایا۔‬
‫اسلم کا قانون یہ قرار پایا کہ جو لوگ جنگ میں گرفتار ہوں ان کو یا تو احسان کے طور پر‬
‫رہا کر دیا جائے یا فدیہ لے کر چھوڑا جائے یا دشمن کے مسلمان قیدیوں سے ان کا مبادلہ کر‬
‫لیا جائے۔ لیکن اگر یونہی رہا کر دینا جنگی مصالح کے خلف ہو‪ ،‬اور فدیہ وصول نہ ہو سسسکے‪،‬‬
‫اور دشمن اسیران جنگ کا مبادلہ کرنے پر بھی رضامند نہ ہو تسو مسسلمانوں کسسو حسسق ہے کسہ‬
‫انہیں غلم بنا کر رکھیں۔ البتسہ اس قسسم کسے غلمسسوں کسے سساتھ انت ہائی حسسسن سسلوک اور‬
‫رحمت و رافت کے برتاؤ کا حکم دیا گیا ہے‪ ،‬ان کو تعلیم و تربیت دینے اور انہیسسں سوسسسائئی‬
‫کے عمدہ افراد بنانے کی ہدایت کی گئی ہے اور مختلف صورتیں ان کسی ر ہائی کسے لئے پیسدا‬
‫کی گئی ہیں۔ )سید ابو العلی مودودی‪ ،‬تفہیمات‪ ،‬جلد دوم(‬

‫جنگ ن ہ کرن ے وال ے غیر مسلموں کو غلم بنان ے کی‬
‫ممانعت‬
‫ایسے غیر مسلم جو مسلمانوں سے جنگ نہیں کرتے‪ ،‬اسلم میں انہیں قطعسی طسور‬
‫پر غلم بنانے کی اجازت نہیں ہے۔ قدیم عرب میں دنیا کے بین القسسوامی قسسانون ک سے‬
‫تحت فاتح مفتوح کے جنگی قیدیوں کو غلم بنا لیا کرتا تھا۔ ان جنگی قیسسدیوں میسسں‬
‫فوجی بھی شامل ہوتے تھے اور عوام بھی۔ اسلم ن سے ان لوگسسوں ک سے خلف قطعسسی‬
‫طور پر کسی بھی کاروائی کو حرام قرار دیا ہے جو جنگ میں شریک نہیں ہیں۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور خلفاء راشدین ک سے زمسسانے میسسں محسسدود‬
‫مدت کے لئے صرف ان لوگوں کو غلم بنایا گیا جو کہ جنسسگ میسسں شسسریک ہوا کرت سے‬
‫تھے۔ غیر مقاتلین‪ ،‬خواہ وہ مسلمان ہوں یا نہ ہوں‪ ،‬کے خلف کسسسی ب ھی قسسسم کسسی‬
‫جنگی کاروائی اسلم میں متفقہ طور پر ممنوع ہے۔‬
‫كسم وبينهسم ميَثساقٌ أ َو جساُءوك ُم حصسرت صسدورهُ َ‬
‫ن‬
‫ن إ َِلسى َقسوْم ٍ ب َي ْن َ ُ ْ َ َ ْ َ ُ ْ ِ‬
‫ن يَ ِ‬
‫إ ِل ّ اّلس ِ‬
‫مأ ْ‬
‫ْ َ‬
‫صسُلو َ‬
‫ْ َ ِ َ ْ ُ ُ ُ ْ‬
‫ذي َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫م وَلوْ َ‬
‫م‬
‫م فَل َ‬
‫م أو ْ ي ُ َ‬
‫يُ َ‬
‫م َفسإ ِ ْ‬
‫هل َ‬
‫ن اع ْت ََزلسوك ْ‬
‫قسات َلوك ْ‬
‫م ع َلي ْكس ْ‬
‫سسلطهُ ْ‬
‫شاَء الل ُ‬
‫مه ُ ْ‬
‫قات ِلوا قَوْ َ‬
‫قات ُِلوك ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ً‬
‫جع َ َ‬
‫سِبيل‪) .‬النساء ‪(4:90‬‬
‫م وَأل َ‬
‫م يُ َ‬
‫ما َ‬
‫م َ‬
‫م ال ّ‬
‫م ع َلي ْهِ ْ‬
‫ه لك ْ‬
‫ل الل ُ‬
‫م فَ َ‬
‫سل َ‬
‫وا إ ِلي ْك ْ‬
‫قات ِلوك ْ‬
‫فَل ْ‬
‫ق ْ‬
‫)ان لوگوں سے جنگ جائز نہیں ہے( جو کسی ایسی قوم سے جا ملیں جن ک سے سسساتھ تم ہارا‬
‫معاہدہ ہے۔ اسی طرح ان لوگوں کے ساتھ جنگ بھی جائز نہیں ہے جو تم ہارے پسساس آت سے ہیسسں‬
‫لیکن وہ لڑائی سے دل برداشتہ ہیں‪ ،‬نہ تم سے لڑنا چاہتے ہیں اور نہ ہی اپنی قسسوم س سے۔ اگسسر‬
‫اللہ چاہتا تو انہیں تم پر مسلط کر دیتا اور وہ بھی تم سے جنگ کرتے۔ اگسسر وہ تسسم سسے کنسسارہ‬
‫کش ہو جائیں اور جنگ سے باز رہیں اور تم ہاری طسسرف صسسلح کسسا ہاتھ بڑ ھائیں تسسو اللسہ نسے‬
‫تمہارے لئے ان پر دست درازی کا کوئی راستہ کھل نہیں رکھا ہے۔‬

‫حدثنا قيس بن حفص‪ :‬حدثنا عبد الواحد‪ :‬حدثنا الحسن‪ :‬حدثنا مجاهد‪ ،‬عسسن عبسسد اللسسه‬
‫بن عمرو‪ ،‬عن النبي صلى الله عليه وسلم قسسال‪) :‬مسسن قتسسل نفسسا ً معاهسسدا ً لسسم ي ُسسرح‬
‫رائحة الجنة‪ ،‬وإن ريحها ليوجد مسسن مسسسيرة أربعيسسن عامسًا(‪) .‬بخسساري‪ ،‬كتسساب السسديات‪،‬‬
‫حديث ‪(6914‬‬
‫سیدنا عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے‬
‫ارشاد فرمایا‪" ،‬جس کسی نے معاہدے میں شسسریک کسسسی فسسرد کسسو قتسسل کیسسا‪ ،‬وہ جنسست کسسی‬
‫خوشبو نہ پا سکے گا اگرچہ اس کی خوشبو )اتنی ہے( کہ چالیس سال سفر کے فاصسسلے س سے‬
‫بھی آ جاتی ہے۔‬

‫حدثنا أحمد بن يونس‪ :‬أخبرنا الليث‪ ،‬عن نافع‪ :‬أن عبد الله رضي الله عنه أخبره‪ :‬أن‬
‫امرأة وجدت في بعض مغازي النبي صلى الله عليه وسلم مقتولة‪ ،‬فأنكر رسول الله‬
‫صلى الله عليه وسلم قتل النساء والصبيان‪) .‬بخاري‪ ،‬كتاب الجهاد‪ ،‬حديث ‪(3014‬‬
‫سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ ایک جنگ میسسں نسسبی صسسلی اللسہ علیسہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے دیکھا کہ ایک عورت قتل ہوئی پڑی ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے‬
‫‪136‬‬

‫جنگ میں خواتین اور بچوں کو قتل کرنے سے )سختی سے( منع فرما دیا۔‬

‫حمید بن زنجویہ نے کتاب الموال میں ایک تفصیلی باب قائم کیا ہے جس کسسا عنسسوان‬
‫ہے "باب الحکم رقاب اھل الصلح و ھل یحل سباؤھم ام ھم احسسرار؟" اس کسسا معنسسی‬
‫ہے کہ "اہل صلح کو غلم بنانے کسا حکسم اور کیسا انہیسں غلم بنانسا جسائز ہہہے یسا وہ آزاد‬
‫ہیں؟" اس باب میں انہوں نے تفصیل سے بہت سسسی احسسادیث و آثسسار اکٹھہہے کئے ہیسسں‬
‫جن کے مطابق‪ ،‬وہ لوگ جو جنگ میں شریک نہیں ہیں‪ ،‬انہیں غلم بنانا کسی صورت‬
‫میں جائز نہیں ہے۔‬
‫انہوں نے دور صحابہ و تابعین کا یہ متفق اور جاری عمل )سنت( بیان کیسسا ہے ک سہ‬
‫غیر مقاتلین کو قطعی طور پر غلم نہیں بنایا جاتا۔ سیدنا عمسسر رضسسی اللسہ عن سہ کسے‬
‫زمانے میں بعض اھل صلح کو غلطی سے قید کر لیا گیا تو انہوں نے ان سب کو آزاد‬
‫کرنے کا حکم دیا۔ اسی طرح بنو امیہ کے دور میں بعض بربروں کو غلم بنسسا لیسسا گیسسا‬
‫تھا۔ سیدنا عمر بن عبدالعزیز رحمۃ اللہ علیہ نے خلیفہ بنتے ہی ان سب کو آزاد کرنسسے‬
‫کا حکم دیا۔‬
‫اس معاملے میں مسلمانوں کے اہل علم میں کوئی اختلف موجود نہیں ہے۔‬

‫ع ہد رسالت میں متحارب قوتیں‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے جنگ کرنے والے چارطرح کے تھے‪:‬‬
‫• قریش مکہ‪ :‬یہ وہ لوگ تھے جن کے سامنے حضور نسسبی کریسسم صسسلی اللسہ علیسہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے دین اور انسانیت کی دعوت پیش کی۔ انہوں نسے نسہ صسرف اس‬
‫دعوت کو قبول کرنے سے انکار کر دیسسا بلکسہ اس دعسسوت کسسی راہ میسسں شسسدید‬
‫روڑے اٹکائے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جب مکہ چھوڑ کسسر مسسدینہ‬
‫ہجرت کی تو یہ اب بھی باز نہ آئے اور طرح طرح سے مسسدینہ میسسں مسسسلمانوں‬
‫کو تنگ کرنے لگے۔‬
‫• عرب کے ی ہود‪ :‬مسسدینہ میسسں جسسو ی ہودی آبساد ت ھے‪ ،‬میثسساق مسدینہ کسے تحست وہ‬
‫اسلمی حکومت کے شہری قسسرار پسسائے ت ھے۔ مسسسلمانوں اور ان ک سے درمیسسان‬
‫معاہدہ تھا کہ کسی ایک فریق پر کسی بھی حملے کی صورت میں وہ مل کسسر‬
‫دشمن کا مقابلہ کریں گے۔ اس معاہدے کے تحت یہود کو مکمل مسسذہبی آزادی‬
‫فراہم کر دی گئی تھی۔ جب اہل مکہ نے مسلمانوں پر مختلف حملسسے کئے تسسو‬
‫انہوں نے بجائے مسلمانوں کا ساتھ دینے کے الٹا ان کے خلف سازشسسیں کیسسں۔‬
‫اس جرم کی پاداش میں انہیں مدینہ سے جلوطن کیا گیا تو یہ خیسسبر میسسں جسسا‬
‫کر آباد ہو گئے اور وہاں قلعہ بند ہو کر مدینہ پر حملے کی تیاری کرنے لگے۔‬
‫• لوٹ مار کرنے والے وحشی عرب قبائل‪ :‬عرب کے اطراف میں ایسے قبسسائل‬
‫بکھرے ہوئے تھے جن کا پیشہ ہی لوٹ مار کرنا ت ھا۔ چسسونکہ مسسدینہ ایسسک زرعسسی‬
‫علقہ تھا اور یہاں زرعی پیداوار کے علوہ جانوروں کی چراگسساہیں ب ھی تھیسسں‪،‬‬
‫اس وجہ سے مدینہ ان لوگوں کا خاص ہدف تھا۔ مدینہ کی ریاست سے انہیں یہ‬
‫خطرہ لحق تھا کہ اگر یہ ریاست مضبوط بنیادوں پر مستحکم ہو گئی تو انہیں‬
‫لوٹ مار کا پیشہ ترک کرنا پڑے گا۔ اس وجہ سے یہ لوگ مدینہ پر بار بار حملسسہ‬
‫آور ہونے کی منصوبہ بندی کرتے رہے۔‬
‫• سلطنت روم‪ :‬رسول اللہ صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے اسسسلم کسی دعسسوت‬
‫قیصر روم‪ ،‬ہرقل )‪ (Herculeas‬کے سامنے بھی رکھی۔ ہرقل ایک صاحب علسسم‬
‫بادشاہ تھا۔ اس نے قریش مکہ کے وفد سسے حضسسور کسے بسارے میسں معلومسسات‬
‫حاصل کیں اور اس نتیجے پر پہنچ گیا کہ آپ اللہ کے سچے رسول ہیں۔ اس نے‬
‫‪137‬‬

‫اپنے ماتحت حبشہ کےبادشاہ نجاشی کے اسلم قبول کر لینے پسسر ب ھی ان سسے‬
‫کوئی تعرض نہ کیا۔ اس حقیقت کو پہچاننے کے باوجود ہرقسسل‪ ،‬اپن سے سسساتھیوں‬
‫اور مذہبی علماء کے دباؤ پر‪ ،‬آپ سے جنگ کرنے پر تیار ہو گیا۔ رومسسی افسسواج‬
‫کی ایک بڑی جنگ مسلمانوں کے ایک گروہ سے موتہ کے مقام پر ہوئی۔ جنسسگ‬
‫تبوک میں ہرقل نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی بذات خود آمد کسسا‬
‫سن کر مقابلہ کرنے سے پہلوتہی کی کیونکہ اہل کتاب ہونے ک سے نسساتے اس سے ی سہ‬
‫علم تھا کہ خدا کے رسول کے سامنے کوئی فوج ٹھہر نہیں سکتی۔‬

‫ع ہد رسالت میں جنگی قیدی‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے دس سال کے عرصے میں ان چاروں گروہوں‬
‫سے جنگ کرنے کے لئے ‪ 72‬سے زائد مہمات روانہ کیں۔ اگر ان تمام جنگوں کا جسسائزہ‬
‫لیا جائے تو یہ معلوم ہوتا ہے کہ آپ نے جنگی قیدیوں کے ساتھ ی ہی دو معسساملت کئے۔‬
‫اس کے علوہ بسا اوقات آپ کے زمانے میں جنگسسی قیسسدیوں کسسو غلم ب ھی بنایسسا گیسسا‬
‫لیکن سیرت طیبسہ کسسو اگسر مجمسوعی طسور پسر دیک ھا جسائے ایسسے واقعسات محسض‬
‫استثنائی حیثیت رکھتے ہیں۔‬
‫جن جنگی قیدیوں کو غلم بنایا گیا‪ ،‬انہیں بھی ہمیشہ کے لئے غلم نہیسسں بنایسسا گیسسا‬
‫بلکہ ان کی حیثیت قیدیوں کی سی تھی۔ قیدیوں کو سرکاری جیل میں رکھنسے کسسی‬
‫بجائے مختلف افراد کسے حسوالے کسر دینسے کسی وجسہ یسہ ت ھی کسہ اس دور میسں عسرب‬
‫معاشرے میں جیل کا ادارہ معرض وجود میں نہیں آیا تھا۔ یہی وجہ ت ھی قیسسدیوں کسسو‬
‫ایک جگہ رکھنے کی بجائے مختلف افراد کی تحویسسل میسسں دے دیسسا جاتسسا۔ ی سہ افسسراد ان‬
‫قیدیوں کے ساتھ اس طرح سے معاملہ کرتے‪:‬‬
‫• دوران قید‪ ،‬قیدیوں کی ہر بنیادی ضرورت کا خیال رک ھا جاتسسا۔ قیسسدیوں ک سے‬
‫ورثا سے رابطہ کر کے ان سے فدیہ وصول کیا جاتا اور قیدیوں کو ر ہا کسسر دیسسا‬
‫جاتا۔‬
‫• قیدیوں سے کچھ عرصہ خدمت لینے کے بعد انہیں رہا کر دیا جاتا۔‬
‫• دوران قید‪ ،‬قیدیوں کی اخلقی تربیت کی جاتی۔ انہیں اسلم کسسی تعلیمسسات‬
‫سے روشناس کروایا جاتا۔ اگر کوئی قیدی اسلم قبول کر لیتا تو اس سے فسسورا ً‬
‫آزاد کر دیا جاتا۔‬
‫• سسسرکاری سسسطح پسسر ان قیسسدیوں ک سے بسسدلے‪ ،‬دشسسمن کسسی قیسسد میسسں موجسسود‬
‫مسلمان قیدیوں کا تبادلہ کر لیا جاتا۔‬
‫• ان قیدیوں کو وہی انسانی حقوق فراہم کئے جاتے تھے جن کی تلقین اسسسلم‬
‫نے غلموں اور زیر دستوں سے متعلق کی تھی۔‬
‫• قیدیوں کو اپنی گرفتاری کے فورا ً بعد مکاتبت کا حق حاصل ہوتا تھا۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے واضح طسسور پسسر ی سہ تلقیسسن فرمسسا دی ت ھی ک سہ‬
‫دشمن کے جو افراد جنگ میں حصہ نہ لیں‪ ،‬ان کے خلف کوئی کاروائی نہ کی جائے۔‬
‫اس دور میں عام رواج تھا کہ خواتین بھی فوج کے ساتھ آیا کرتی تھیں۔ ایک طسسرف‬
‫وہ شعر و نغمہ کے ذریعسے اپنسے سسسپاہیوں ک سے حوصسسلے بڑ ھاتیں اور دوسسسری طسسرف‬
‫زخمیوں کی خبرگیری کرتیں۔‬
‫ایسی خواتین جنگ میں براہ راست شریک ہوا کرتی تھیسسں۔ ان کسے سسساتھ پسسوری‬
‫دنیا میں یہ معاملہ کیا جاتا تھا کہ انہیں گرفتار کر کے طوائف بنا دیا جاتسسا ت ھا۔ اسسسلم‬
‫‪138‬‬

‫میں چونکہ قحبہ گری کی مکمل ممانعت موجود ہے‪ ،‬اس وجہ سے اگر ایسی خواتین‬
‫جنگی قیدی بنائی جاتیں تو انہیں مسلم معاشرے میں جذب کرنے کا ی سہ طریسسق کسسار‬
‫وضع کیا گیا کہ انہیں مختلف افراد کی تحویل میں دے کر ان کے خاندان کا حصسہ بنسسا‬
‫دیا جاتا اور کچھ عرصے میں یہ مسلم معاشرے کا حصسہ بسسن کسسر آزاد ہو جایسسا کرتسسی‬
‫تھیں۔‬
‫پچھلے ابواب میں ہم تفصیل سے بیان کر چکے ہیں کہ اس خاتون کو کم و بیسسش‬
‫وہی حقوق حاصل ہوا کرتے تھے جو اس شخص کی آزاد بیوی کو حاصل ہوتے ت ھے۔‬
‫ایسی خواتین کو اگر اپنا آقا پسند نہ ہوتا تو انہیں یہ سہولت حاصل تھی کہ ی سہ فسسوری‬
‫طور پر مکاتبت یا سرکاری مدد کے ذریعے اس سے نجات حاصل کر سکتی تھیں۔‬
‫ان خواتین کو فوری طور پر آزاد نہ کرنے کی بنیادی وجہ یہی تھی ک سہ بہرحسسال ی سہ‬
‫خواتین دشمن فوج سے تعلق رکھتی تھیں اور ان کے شسسوہر اور ب ھائی وغیسسرہ جنسسگ‬
‫میں مارے جا چکے ہوتے تھے۔ ان خواتین کسسو مسسسلم معاشسسرے سسے فسسوری طسسور پسسر‬
‫کوئی ہمدردی بھی نہ ہوا کرتی تھی۔ انہیں فوری طور پر آزاد کر دینے کسسا نسستیجہ ی ہی‬
‫نکلتا کہ اپنی ضروریات پوری کرنے کے لئے انہیں عصمت فروشی کا سہارا لینسسا پڑتسسا‬
‫جس کا نتیجہ معاشرے کی اخلقی تباہی کے سوا اور کچھ نہ نکل سکتا تھا۔ اس کسسی‬
‫بجائے ان کے لئے باعزت راستہ یہ نکال گیا کہ انہیں مختلف افسسراد کسسی ذرا کسسم درجسے‬
‫ہی کی سہی لیکن بیوی بنا دیا جاتا اور کچھ ہی عرصے میں جب یہ مسسسلم معاشسسرے‬
‫کا حصہ بن جاتیں تو انہیں ام ولد‪ ،‬مکاتبت اور سرکاری امداد کے قسسوانین ک سے تحسست‬
‫آزاد کر دیا جاتا۔‬
‫مسلم معاشروں کے برعکس دیگر معاشروں میں یہ طریق کار اختیسسار کیسسا گیسسا‬
‫تھا کہ جنگ میں حاصل ہونے والی خسسواتین کسسو لون سڈی بنسسا کسسر عصسسمت فروشسسی پسسر‬
‫مجبور کر دیا جاتا اور انہیں اپنی اولد کے ساتھ ساتھ آقا کو بھی ایک طے شسسدہ رقسسم‬
‫فراہم کرنا پڑتی۔ اسلم نے اس کے برعکسسس ان کسسی عفسست و عصسسمت کسسو برقسسرار‬
‫رکھنے کا طریقہ اختیار کیا جس کے نتیجے میں بسے شسسمار خسسواتین کسسو آزادی نصسسیب‬
‫ہوئی۔‬

‫ع ہد رسالت کی جنگی م ہمات‬
‫اب ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور خلفاء راشدین کسی ایسسک ایسسک جنگسسی‬
‫مہم کو دیکھتے ہیں کہ انہوں نے اپنے زمانے میں جنگی قیدیوں کسے سسساتھ کیسسا سسسلوک‬
‫کیا۔ ان جنگوں کی تفصیلت ہم سیرت ابن ہشام‪ ،‬مغازی ابن اسسسحق‪ ،‬طبقسسات ابسسن‬
‫سعد‪ ،‬ابن جوزی کی کتاب تلقیح فھوم اور صفی الرح ٰمن مبسسارک پسسوری کسسی کتسساب‬
‫"الرحیق المختوم" میں دیکھی جا سکتی ہیں۔‬
‫جیسا کہ سیرت کے طالب علم جانتے ہیں کہ "غزوہ" اس مہم کو کہتے ہیسسں جسسس‬
‫میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم خود شسسامل ت ھے اور "سسسریہ" اس م ہم کسسو‬
‫کہتے ہیں جو آپ نے روانہ فرمائی لیکن اس میں آپ خود شامل نہ تھے۔‬

‫ہجرت س ے جنگ بدر کا زمان ہ‬
‫جنگ بدر سے پہلے غزوات زیادہ تر قریش کے تجارتی قافلوں کو روکنے کے لئے کیسسے‬
‫گئے۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ مسلمانوں کی مسسدینہ ہجسسرت کسے بعسسد قریسسش مسلسسسل‬
‫انہیں تنگ کر رہے تھے۔ کبھی مدینہ پر حملہ کر کے ان کے مویشی لسسوٹ لیت سے۔ کب ھی‬
‫مکہ میں موجود مسلمانوں پر ظلم و ستم کرتے۔ اپنی تجارت کے ذریعے جو مال یسسہ‬
‫‪139‬‬

‫کمایا کرتے تھے‪ ،‬اس کا بڑا حصہ ہتھیاروں پسسر صسسرف کرتسے ت ھے۔ ان لوگسسوں کسسی یسہ‬
‫سرکشی اللہ کے ایک پیغمبر کے مقابلے پر تھی جس کے جسسواب میسسں ان پسسر خسسدائی‬
‫عذاب جنگ بدر میں نازل ہوا۔ بدر سے پہلے غزوات کی تفصیل یہ ہے۔‬
‫‪ .1‬سریہ سیف البحر )‪ :(1H / 623CE‬اس سریہ کسسا مقصسسد قریسسش ک سے تجسسارتی‬
‫قافلے سے متعلق معلومات اکٹھی کرنا ت ھا۔ اس میسسں جنسسگ کسسی نسسوبت ہی‬
‫نہیں آئی۔‬
‫‪ .2‬سریہ رابغ )‪ :(1H / 623CE‬اس سریہ کا مقصد قریش کے تجارتی قافلے سسے‬
‫متعلق معلومات اکٹھی کرنا تھا۔ اس میں معمولی تیسسر انسسدازی ہوئی لیکسسن‬
‫باقاعدہ جنگ کی نوبت نہیں آئی۔‬
‫‪ .3‬سریہ خرار )‪ :(1H / 623CE‬یہ مہم بھی معلومات اکٹھی کرنے کے لئے کی گئی۔‬
‫اس میں بھی کسی جنگ کی نوبت نہیں آئی۔‬
‫‪ .4‬غزوہ ابوا )‪ :(1H / 623CE‬یہ غزوہ قریش کے تجارتی قافلے کو روکنے ک سے لئے‬
‫کیا گیا تھا۔ اس میں میں جنگ کی نوبت ہی نہیں آئی بلکہ ابوا کے علقے کسے‬
‫رہنے والے بنو ضمرہ سے صلح کا معاہدہ طے پایا۔‬
‫‪ .5‬غزوہ بواط )‪ :(2H / 623CE‬اس غزوے میں بھی جنگ کی نوعیت نہیں آئی۔‬
‫‪ .6‬غزوہ سفوان )‪ :(2H / 623CE‬یہ غزوہ ڈاکوؤں کے خلف کاروائی پر مبنی تھا۔‬
‫اس میں بھی جنگ کی نوبت نہیں آئی۔‬
‫‪ .7‬غزوہ ذو العشیرۃ )‪ :(2H / 623CE‬اس غزوے کا مقصد بھی قریش کے تجارتی‬
‫قافلے کو روکنا تھا۔ اس میں بھی جنگ کی نوبت نہیں آئی بلکہ دو قبائل سے‬
‫امن کا معاہدہ طے پایا۔‬
‫‪ .8‬سریہ عبداللہ بن جحش )‪ :(2H / 624CE‬یہ مہم صرف بارہ افسسراد پسسر مشسستمل‬
‫تھی اور اس کا مقصد معلومات حاصل کرنا تھا۔ اس سسسریے میسسں معمسسولی‬
‫جنگ ہوئی۔ دشمن کا ایک آدمسسی مقتسسول اور دو افسسراد بطسسور قیسسدی گرفتسسار‬
‫ہوئے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم نسے ان دونسسوں قیسسدیوں کسسو بغیسسر‬
‫کسی معاوضے کے آزاد کر دیا اور مقتول کی دیت بھی ادا فرمائی۔‬
‫غزوہ بدر مسلمانوں اور قریش کے درمیان پہلی باقاعدہ جنگ ت ھی۔ اس جنسسگ میسسں‬
‫اللہ کا عذاب قریش کے سرداروں پر نازل ہوا اور ان کی وہ پوری قیادت جو اللہ کے‬
‫رسول کے مقابلے پر سرکشی سے آ کھڑی ہوئی تھی‪ ،‬ہلک ہو گئی۔ ان کسسی قیسسادت‬
‫میں باقی وہ افراد بچے جو بہرحال رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسے سسساتھ‬
‫سرکش نہیں تھے۔ یہ لوگ بعد میں ایمان لے آئے۔‬
‫‪ .9‬غزوہ بدر )‪ :(2H / 624CE‬اس جنگ میں مسلمانوں کسسو فتسسح حاصسسل ہوئی‪،‬‬
‫قریش کے ستر افراد قتل اور ستر گرفتار ہوئے۔ ان تمام افراد کسسو فسسدیہ لسے‬
‫کر رہا کیا گیا۔ فدیہ کی رقم ایک سے چار ہزار درہم مقرر کی گئی۔ جو لوگ‬
‫فدیہ ادا نہ کر سکتے تھے‪ ،‬مدینہ کے بچوں کو لکھنسسا پڑھنسسا سسسکھانے کسسو ان کسسا‬
‫فدیہ قرار دیا گیا۔‬
‫اس جنگ میں رسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسے دامسساد ابوالعسساص‬
‫)رضی اللہ عنہ( بھی جنگی قیدی تھے۔ ان کا فدیہ ی سہ ط سے پایسسا ک سہ وہ آپ کسسی‬
‫صاحبزادی زینب رضی اللہ عنہا کو مدینہ آنے سے نہ روکیسسں گ سے۔ حضسسور ک سے‬
‫اپنے چچا عباس )رضی اللہ عنہ( بھی قیدی بن کر آئے تھے۔ انصار نے آپ سے‬
‫یہ درخواست کی کہ ان کے فدیے میں کمی کسی جسائے لیکسن آپ نسے ان سسے‬
‫‪140‬‬

‫پورا فدیہ وصول کرنے کا حکم دیا۔ بعض افراد کا فدیہ معسساف کسسر ک سے انہیسسں‬
‫بطور احسان بھی چھوڑ دیا گیا۔ قریش کے سردار ابوسفیان کے بیٹے عمسسرو‬
‫کو مسلمان قیدی سعد بن نعمان رضی اللہ عنہ کے بدلے رہا کر دیا گیا۔‬

‫جنگ بدر س ے جنگ احد تک کا زمان ہ‬
‫جنگ بدر کے نتیجے میں کفار مکہ میں ایک شدید رد عمل پیدا ہوا اور انہوں نسسے اس‬
‫کے فورا ً بعد دوسری جنگ کی تیاری شروع کر دی۔ ان کے علوہ رسسسول الل سہ صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو دو محاذوں پر فوجی کاروائی کرنسسا پسسڑی۔ ان میسسں سسے ایسسک‬
‫مدینہ کے یہودی قبائل تھے‪ ،‬جو درپردہ قریش سے ملے ہوئے ت ھے اور مسسدینہ کسسی اس‬
‫نوزائیدہ حکومت پر انسدر سسے ضسسرب لگانسا چساہتے ت ھے۔ دوسسرے عسرب کسے دی ہاتی‬
‫علقوں کے راہزن تھے جنہیں مدینہ کی اس حکومت کے قیام میں اپنی لوٹ مسسار کسسا‬
‫خاتمہ ہوتا نظر آ رہا تھا۔ اس دور کی جنگی مہمات کی تفصیل یہ ہے۔‬
‫‪ .10‬غزوہ بنی سلیم )‪ :(2H / 624CE‬قبیلہ غطفان کی شاخ بنو سلیم مدینہ پر حملہ‬
‫آور ہونے کی تیاریاں کر رہے تھے۔ ان کی جنگی تیسساریوں کسسو روکن سے ک سے لئے‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے دو سو سواروں کے ساتھ اچانک حملہ‬
‫کر دیا۔ بنو سلیم میں اچانک بھگدڑ مچ گئی اور وہ لوگ اپنے پانچ سسسو اونسسٹ‬
‫چھوڑ کر فرار ہو گئے۔ اس جنگ میں کوئی جنگی قیدی ہاتھ نہیسسں لگسسا۔ بنسسو‬
‫سلیم کا ایک غلم مسلمانوں کے قبضے میں آیا جسے رسول اللسہ صسلی اللسہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے آزاد کر دیا۔‬
‫‪ .11‬غزوہ بنو قینقاع )‪ :(2H / 624CE‬مدینہ میں یہود کے تین قبیلے بنو قینقاع‪ ،‬بنسسو‬
‫نضیر اور بنو قریظہ آباد تھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کسسی مسسدینہ‬
‫تشریف آوری کے فورا ً بعد مدینہ کے مسلمانوں اور یہودیوں کے درمیان ایسسک‬
‫معاہدہ طے پایا تھا جس کے مطابق یہود نے رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم کو مدینہ کی ریاست کا سربراہ تسسسلیم کسسر لیسسا ت ھا۔ کسسسی ب ھی ایسسک‬
‫فریق پر حملے کی صورت میں دوسرے فریق کی ذمہ داری ت ھی ک سہ وہ اس‬
‫کی مدد کرے۔‬
‫بنو قینقاع‪ ،‬جو یہود کا سب سے بہادر قبیلہ سمجھا جاتا ت ھا‪ ،‬نسے اس معا ہدے‬
‫پر عمل درآمد کرنے کی بجائے اشتعال انگیز کاروائیاں شروع کر دیں۔ انہوں‬
‫نے مسلمانوں کے اوس و خزرج قبائل میں جنگ کروان سے کسسی سسسازش کسسی۔‬
‫مسلمانوں سے چھیڑ چھاڑ شسسروع کسر دی اور ایسک خساتون کسی آبسرو ریسسزی‬
‫کرنے کی کوشش کی جس کسے نسستیجے میسسں ایسسک مسسسلمان اور ایسسک ی ہودی‬
‫مارے گئے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے انہیں تنبیہ کی تو انہوں نے اعلن جنگ‬
‫کر دیا۔ یہ لوگ قلعہ بند ہو گئے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ان کا‬
‫محاصرہ کر لیا۔ پندرہ دن کے محاصرے کے بعد انہوں نے اس شرط پر ہتھیسسار‬
‫ڈال دیے کہ رسول اللہ ان کے متعلق جو فیصلہ کریں گے‪ ،‬انہیں قبسسول ہہہو گسسا۔‬
‫ان کے تمام افراد کو جنگی قیدی بنا لیا گیا۔ اس کے بعد ان سب کو رہا کسسر‬
‫دیا گیا۔‬
‫‪ .12‬غزوہ سویق )‪ :(2H / 624CE‬غزوہ بدر کے صرف دو ماہ بعد قریسسش مک سہ ک سے‬
‫ایک دستے نے مدینہ پر حملہ کیا اور گوریل طرز کی ایسسک کسساروائی میسسں ایسسک‬
‫انصاری کو ان کے کھیت میں شہید کر دیا۔ رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم نے جوابی کاروائی کے لئے ان کا تعاقب کیا تو یہ لوگ تیزی سے فسسرار‬
‫‪141‬‬

‫ہو گئے۔ ان میں سے کوئی گرفتار نہ ہوا البتہ بہت سی خوراک ی سہ جسساتے ہہہوئے‬
‫اپنا وزن ہلکا کرنے کے لئے پھینک گئے۔‬
‫‪ .13‬غزوہ ذی امر )‪ :(3H / 624CE‬بنو ثعلبہ اور دیگر قبائل نے مدینہ پسسر ایسسک بسسڑی‬
‫چڑھائی کی تیاریاں شروع کر دیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ان‬
‫کے مقابلے پر ساڑھے چار سو افراد پر مشتمل ایک لشکر لے کر تشریف لے‬
‫گئے جس سے دہشت زدہ ہو کر یہ لوگ منتشر ہو گئے۔ اس مہم میں باقاعسسدہ‬
‫کوئی جنگ نہ ہوئی۔ دشمن کا ایک شخص گرفتار ہوا جس ن سے اسسسلم قبسسول‬
‫کر لیا اور مسلمانوں کو دشمن فوج سے متعلق اہم معلومات فراہم کیں۔‬
‫‪ .14‬غزوہ بحران )‪ :(3H / 624CE‬یہ غزوہ بھی دشمن کی نقل و حرکت سے متعلق‬
‫معلومات کے حصول کے لئے پیش آیا۔ اس میں جنگ نہیں ہوئی۔‬
‫‪ .15‬سریہ زید بن حارثہ )‪ :(3H / 624CE‬یہ مہم قریش کے ایک تجسسارتی قسسافلے کسسو‬
‫روکنے کے لئے کی گئی تھی جو معروف سسساحلی راسسستہ چ ھوڑ کسسر نجسسد کسے‬
‫راستے جا رہا تھا۔ اس مہم میں قافلے کے سردار فرات بن حیان گرفتسسار ہو‬
‫کر مدینہ لئے گئے۔ یہاں انہوں نے اسلم قبول کر لیا۔‬
‫اس کے بعد جنگ احد کی شکل میں مسلمانوں کو ایک بڑی جنگ پیسسش آئی۔ غسسزوہ‬
‫احد کے بعد بھی مدینہ پر حملوں کا سلسلہ جاری رہا۔‬
‫‪ .16‬غزوہ احد )‪ :(3H / 625CE‬اس جنگ میں مسلمانوں کے ایک دستے کی غلطی‬
‫کی وجہ سے مسلمانوں کا نقصسسان زیسسادہ ہوا۔ اس جنسسگ میسسں کسسوئی فریسسق‬
‫دوسرے فریق کے سپاہیوں کو جنگی قیدی نہ بنا سکا۔‬
‫‪ .17‬غزوہ حمراء السد )‪ :(3H / 625CE‬یہ غزوہ جنگ احد کے دوسرے دن پیش آیا۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو یہ خطرہ لحق تھا کہ جنسسگ احسسد میسسں‬
‫مسلمانوں کو نقصان پہنچانے کے بعد قریش دوبارہ مسسدینہ پسسر حمل سہ آور ہوں‬
‫گے۔ آپ نے مدینہ سے باہر پیش قدمی کی۔ قریش نے مقابلہ کرنے کی بجسسائے‬
‫واپس جانے میں عافیت سمجھی۔ اس غزوے میں مشرکین کے دو جاسوس‬
‫گرفتار ہوئے جنہیں موت کی سزا دے دی گئی۔‬

‫جنگ احد س ے جنگ خندق تک کا زمان ہ‬
‫‪ .18‬سریہ ابو سلمہ )‪ :(4H / 625CE‬جنگ احسسد میسسں اسسسلمی لشسسکر کسسو نقصسسان‬
‫پہنچنے کے باعث دیہاتی عربوں کے قبائل کے حوصلے بلند ہو گئے۔ بنو اسد نے‬
‫مدینہ پر حملے کی تیاریاں شروع کر دیسسں۔ رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم نے سیدنا ابوسلمہ رضی اللہ عنہ کی قیادت میں ڈیڑھ سو سواروں کسسو‬
‫بھیجا۔ بنو اسد حملے سے پہلے ہی منتشسسر ہو گئے اور ان کسسا جنگسسی سسساز و‬
‫سامان مسلمانوں کے حصے میں آیا۔ اس غزوے میں کوئی جنگی قیدی ہاتھ‬
‫نہ آیا۔ لشکر کے امیر سیدنا ابوسلمہ رضی اللہ عنہ اپنے ایسسک پرانسے زخسسم کسے‬
‫باعث شہید ہوئے۔‬
‫‪ .19‬سریہ عبداللہ بن انیس )‪ :(4H / 625CE‬خالد بن سفیان ھذلی مسسدینہ پسسر حملسہ‬
‫آور ہونے کی تیاریاں کر رہا تھا۔ رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے‬
‫سیدنا عبداللہ بن انیس رضی اللہ عنہ کی زیر قیادت ایسسک لشسسکر بھیجسسا۔ اس‬
‫جنگ میں خالد مارا گیا لیکن کوئی شخص گرفتار نہ ہوا۔‬
‫‪ .20‬رجیع کا حادثہ )‪ :(4H / 625CE‬رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے بنسو‬
‫عضل اور بنو قارہ کے کچھ لوگوں کی درخواست پر کچھ صسسحابہ کسسو ان ک سے‬
‫‪142‬‬

‫قبائل میں اسلم کی تعلیم کے لئے بھیجا۔ انہوں نے عہد شکنی کرتے ہوئے ان‬
‫حضرات پر حملہ کر دیا۔ سات افراد کو شہید اور تین کو قیسسدی بنسسا لیسسا گیسسا۔‬
‫ان تین قیدیوں میں سے ایک صحابی کو شہید کر دیا گیا اور دو صحابہ سیدنا‬
‫خبیب اور زید بن دثنہ رضی اللہ عنہما کو غلم بنا کر مک سہ میسسں فروخسست کسسر‬
‫دیا۔ ان دونوں حضرات کو اہل مکہ نے شہید کر دیا۔‬
‫‪ .21‬بئر معونہ کا حادثہ )‪ :(4H / 625CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ستر‬
‫صحابہ کو نجد کی جانب اسلم کی دعوت و تبلیغ کے لئے بھیجسسا۔ ان لوگسسوں‬
‫نے بھی عہد شکنی کی اور ان تمسسام صسسحابہ کسسو شسہید کسسر دیسسا۔ صسسرف ایسسک‬
‫صحابی سیدنا عمرو بن امیہ الضمری رضی اللہ عنہ بچے جنہیسسں غلم بنسسا لیسسا‬
‫گیا۔ انہیں قید کرنے والے شخص مالک کی ماں نے غلم آزاد کرن سے کسسی نسسذر‬
‫مانی تھی جسے پورا کرنے کے لئے اس نے انہیں آزاد کر دیا۔‬
‫‪ .22‬غزوہ بنی نضیر )‪ :(4H / 625CE‬بئر معونہ کے حادثے کے فورا بعد یہودیوں کسے‬
‫دوسرے قبیلے بنو نضیر نے عہد شکنی کرتے ہوئے رسول اللہ صسسلی الل سہ علی سہ‬
‫و ٰالہ وسلم کسسو شسہید کرنسے کسسی کسساروائی کسسی۔ اس کسے جسسواب میسسں ان کسسا‬
‫محاصرہ کر لیا گیا۔ جنگ کی کوئی نوبت نہ آئی اور صرف چھ دن کے بعد ان‬
‫لوگوں نے بھی بنسسو قینقسساع کسسی طسسرح ہتھیسسار ڈال دیسے۔ ان کسے تمسسام جنگسسی‬
‫قیدیوں کو رہا کر دیا گیا اور انہیں اجازت دی گئی کہ وہ اسلحہ کے علوہ اپنسسا‬
‫جو کچھ مال ساتھ لے جا سکتے ہیں‪ ،‬لے کر جلوطن ہو جائیں۔‬
‫‪ .23‬غزوہ نجد )‪ :(4H / 625CE‬غزوہ بنو نضیر سے فارغ ہوتے ہی رسول اللہ صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو اطلع ملی کہ نجد کے علقے میں بنسسو غطفسسان ک سے دو‬
‫لٹیرے قبائل مدینہ پر حملے کی تیاری کر رہے ہیں۔ رسول اللہ صلی الل سہ علی سہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے ان پر حملہ کیا۔ یہ لوگ اپنا مال و اسباب چھوڑ کر تسستر بسستر ہو‬
‫کر پہاڑوں میں پناہ گزین ہوئے۔ اس میں بھی کوئی جنگی قیدی نہ بنایا گیا۔‬
‫‪ .24‬غزوہ بدر دوم )‪ :(4H / 626CE‬قریش نے جنگ احد سے واپسی پر مسلمانوں‬
‫کو یہ چیلنج دیا تھا کہ اگلے سال بدر کے مقام پر دوبارہ جنگ ہو گسسی۔ رسسسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اپنے لشکر کے سسساتھ ی ہاں پہنچ سے۔ قریسسش ب ھی‬
‫مقابلے کے لئے مکہ سے نکلے لیکن راستے ہی میں بددل ہو کسسر واپسسس لسسوٹ‬
‫گئے۔‬
‫‪ .25‬غزوہ دومۃ الجندل )‪ :(4H / 626CE‬حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کسسو اطلع‬
‫ملی کہ شمالی عرب میں دومۃ الجندل کے مقام پسسر لسسٹیرے قبسسائل مسسدینہ پسسر‬
‫حملہ کی تیاریوں میں مصروف ہیں۔ آپ ایک ہزار سواروں ک سے سسساتھ ن ہایت‬
‫ہی رازداری سے وہاں پہنچے تو یہ لوگ مال مویشی چھوڑ کسسر فسسرار ہہہو گئے۔‬
‫اس غزوے میں بھی جنگی قیدیوں کی کوئی نوبت نہ آئی۔‬
‫‪ .26‬غزوہ بنو عبدالمصطلق )‪ :(5H / 626CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫کو یہ اطلع ملی کہ بنو عبدالمصطلق آپ سے جنگ کرنے کی تیاری کسسر ر ہے‬
‫ہیں۔ آپ نے اس خبر کی تصسسدیق کرنسے کسے بعسسد دشسسمن پسسر حملسہ کیسسا۔ بنسسو‬
‫عبدالمصطلق کو شکست ہوئی اور ان کے بہت سے لوگ غلم بنائے گئے۔ ان‬
‫میں ان کے سردار کی بیٹی جویریہ رضی اللہ عنہا بھی تھیں۔‬
‫انہوں نے اپنے آقا سیدنا ثابت بن قیس رضی اللہ عنہ سے مکاتبت کر لسسی اور‬
‫حضور کے پاس مدد کی درخواست لے کر آئیں۔ آپ نے ان کی مکسساتبت کسسی‬
‫رقم ادا کر کے انہیں آزاد کیا اور ان کی رضامندی سے ان سے نکاح کر لیسسا۔‬
‫‪143‬‬

‫جب صحابہ کو یہ خبر ملی تو انہوں نے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم سسسے‬
‫سسرالی تعلق کے باعث بنو عبدالمصطلق کے تمام غلموں کو آزاد کر دیا۔‬
‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کہا کرتی تھیں‪" ،‬میں نے جویریۃ سے بڑھ کر کوئی‬
‫خاتون نہیں دیکھی جو اپنی قوم کے لئے اتنی بابرکت ثابت ہوئی ہو کہ ان کے‬
‫باعث ان کسے رشستے دار بنسو عبدالمصسطلق کسے سسو کسے قریسب قیسدی آزاد‬
‫ہوئے۔"‬
‫اس کے بعد قریش نے عرب کے مختلف قبائل کو مل دس ہزار کا لشکر تیار کیا اور‬
‫مدینہ پر چڑھائی کر دی۔ یہ عرب کی تاریخ کے بڑے لشکروں میں سے ہے۔ مدینہ کی‬
‫کل آبادی بھی اس لشکر سے کہیں کم تھی۔ اس کے بعد بھی جنگوں کا ایک سلسلہ‬
‫تھا جو جاری رہا۔‬
‫‪ .27‬جنگ خندق )‪ :(5H / 626CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم ن سے دفسساعی‬
‫انداز میں مدینہ کے گرد خندق کھود کر دشمن کا مقسسابلہ کرن سے کسسی حکمسست‬
‫عملی تیار کی۔ اس غزوے میں خندق کی وجہ دو بدو لسسڑائی کسسی نسسوبت کسسم‬
‫ہی آئی کیونکہ دشمن کے سپاہی جب خندق پار کرنے کی کوشسسش کرت سے تسسو‬
‫مسلمان ان پر تیر اندازی کر کے انہیں روکتے۔ یہود کا صرف ایسسک قسسبیلہ بنسسو‬
‫قریظہ باقی رہ گیا تھا جو مسلمانوں کا حلیف تھا۔ انہوں نے بجائے اس کے کہ‬
‫مسلمانوں کی مدد کرتے‪ ،‬صلح کا معاہدہ توڑ کر کفسسار کسے لشسسکر کسسو رسسسد‬
‫پہنچانسسا شسسروع کسسر دی۔ الل سہ تعسسالی ن سے اپنسسی قسسدرتی طسساقتوں ک سے ذریع سے‬
‫مسلمانوں کی مدد کی۔ تیز آندھی‪ ،‬طوفان اور سردی ک سے بسساعث کفسسار کسسا‬
‫لشکر تتر بتر ہو گیا اور ان کے حوصلے پست ہو گئے۔ اس موقسسع پسسر رسسسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اعلن فرمایا کہ اب یسہ لسوگ کب ھی مسدینہ پسر‬
‫حملہ آور نہ ہو سکیں گے۔‬
‫‪ .28‬غزوہ بنو قریظہ )‪ :(5H / 626CE‬بنو قریظہ نے عین اس لمحے عہد شکنی کی‬
‫تھی جب مدینہ پر پورے عرب کے لشکر نے حملہ کیا ہوا تھا۔ اس وجہ س سے ی سہ‬
‫لوگ سخت ترین سزا کے مستحق تھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسلم‬
‫نے ان کا محاصرہ کر لیا۔ بنو قریظسہ کسے سسسردار کعسسب بسسن اسسسد نسے ان کسے‬
‫سامنے تین تجاویز پیش کیسسں‪ :‬اسسسلم قبسسول کسسر لیسسا جسسائے‪ ،‬یسسا ہفتسے کسے دن‬
‫مسلمانوں پر اچانک حملہ کیا جائے )یہودی مسسذہب میسسں ہفت سے ک سے دن کسسوئی‬
‫کام کرنا منع تھا( یا پھر اپنے بیوی بچوں کو اپن سے ہاتھوں س سے قتسسل کسسر ک سے‬
‫مسلمانوں پر حملہ کر کے کٹ مرا جائے۔ انہوں نے کوئی تجویز قبول نہ کی۔‬
‫بنو قریظہ میں سے چند افراد اپنی قوم کو چھوڑ کر مسلمانوں سے آ ملسسے۔‬
‫ان کا تفصیلی ذکر ابن سعد نے طبقات الکبری میں کیا ہے۔ ی سہ وہ لسسوگ ت ھے‬
‫جو عہد شکنی کے خلف تھے۔ ان سب کے جان و مال کو محفسسوظ قسسرار دے‬
‫دیا گیا۔ ان میں ابو سعد بن وھب النضری‪ ،‬رفاعہ بن سموال القرظی‪ ،‬ثعلب سہ‬
‫بن سعیہ القرظی‪ ،‬اسید بن سعیہ القرظی‪ ،‬اسد بن عبید القرظی اور عمسسرو‬
‫بن سعدی شامل تھے۔‬
‫چند ہی دن میں بنو قریظہ نے اس شرط پسسر ہتھیسسار ڈال دیےکسہ ان کسسا فیصسسلہ‬
‫قبیلہ اوس کے سردار سیدنا سعد بن معاذ رضی اللسہ عنسہ کریسسں گسے۔ سسسیدنا‬
‫سعد رضی اللہ عنہ نے تورات کے قانون کے یہ فیصلہ کیا کہ ان کے تمسسام لڑنسے‬
‫والے مردوں کو قتل کیا جائے اور خواتین اور بچوں کو غلم بنا لیا جائے۔ بنو‬
‫قریظہ کے جن افراد نے اسلم قبول کیا تھا یا عہد شکنی میں حصہ نہ لیا تھا‪،‬‬
‫انہیں کوئی سزا نہ دی گئی۔‬
‫یہاں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ بنو قریظہ کو اتنی سسسخت سسسزا کیسسوں دی گئی؟‬
‫‪144‬‬

‫اس کی وجہ بالکل واضح ہے کہ پورے عرب نے مسلمانوں پر حمل سہ کسسر رک ھا‬
‫ہے۔ حلیف ہونے کے ناتے بنو قریظہ کا یہ فرض تھا کہ وہ مسسسلمانوں کسسی مسسدد‬
‫کرتے یا کم از کم غیر جانبدار ہی رہتے۔ انہوں نے اس نازک موقع پر اپنا ع ہد‬
‫توڑ کر مسلمانوں پر حملے کی تیاری شروع کر دی۔ اگسسر قسسدرتی آفسست کسے‬
‫نتیجے میں کفار کا لشکر واپس نہ ہوتا تو مسلمان دو طرف سے حملے کسسی‬
‫لپیٹ میں آ کر تہہ تیغ ہو جاتے۔‬
‫اس عہد شکنی کی سزا انہیں ان کے اپنے مقرر کردہ جج ن سے ان ہی ک سے اپن سے‬
‫قانون کے مطابق دی تھی جس کی تائید اللہ تعالی نے خود وحی کسے ذریعسے‬
‫کر دی تھی۔ اس سخت سزا کی بنیادی طور پر وجہ یہی تھی کہ اس قوم پر‬
‫اللہ کے رسول سے عہد شکنی کے باعث ان پر اسی طرز کا عسسذاب مسسسلط‬
‫کیا گیا تھا جیسا کہ اس سے پہلے قوم عاد‪ ،‬ثمود‪ ،‬مدائن‪ ،‬سدوم اور خود بنی‬
‫اسرائیل پر مسلط کیا جاتا رہا ہے۔ بنی اسرائیل کی تاریخ سے یہ معلوم ہوتا‬
‫ہے کہ جن قوموں کے ساتھ ان کے معاہدات رہے ہیں‪ ،‬وہ خود ان پسسر معاہہہدات‬
‫کی خلف ورزی کی صورت میں یہی سزا مسلط کرتے ر ہے ہیسسں۔ ہم ی ہاں‬
‫تورات کی متعلقہ آیات نقل کر رہے ہیں‪:‬‬
‫اگر وہ صلح کرنے سے انکار کریں اور لڑائی پر اتر آئیں تسسو تسسم اس‬
‫شہر کا محاصرہ کر لینا اور جب خداوند تمہارا خدا اسے تمہارے ہاتھ‬
‫میں دے دے تو اس میں سے سب مردوں کو تلوار سے قتل کر دینسسا‬
‫لیکسسن عورتسسوں‪ ،‬بچسسوں اور مویشسسیوں اور اس ش سہر کسسی دوسسسری‬
‫چیزوں کو تم مسال غنیمست کسے طسور پسسر اپنسے لئے لسے لینسا۔ )کتساب‬
‫استثنا‪ ،‬باب ‪(20‬‬

‫اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ مسلمانوں نے اس معسساملے میسسں قسسرآن ک سے نسسرم‬
‫قانون کی بجائے تورات کے سخت قانون پر عمل کیوں کیا۔ اس کی بنیسسادی‬
‫وجہ یہ ہے کہ ایسا اللہ تعالی کے ایک خصوصی حکم کے تحت ہوا ت ھا۔ سسسیدنا‬
‫سعد بن معاذ رضی اللہ عنہ نے جو فیصلہ دیا تھا‪ ،‬اس کی تائید اللہ تعالی کی‬
‫طرف سے کر دی گئی تھی۔‬
‫قوموں پر عذاب سے متعلق اللہ تعالی کا یہ قسسانون ہے کسہ وہ جسسس قسسوم کسسا‬
‫انتخاب کر کے اس کی طرف اپنا رسول مبعوث فرما دے‪ ،‬اس قوم کو ایسسک‬
‫خصوصی حیثیت حاصل ہو جاتی تھی۔ رسول اللہ تعالی کے خصوصسسی دلئل‬
‫اور معجزات کے ذریعے اس قوم کے سامنے اس درجے میں اتمام حجت کسسر‬
‫دیتا تھا کہ ان کے پاس ایمان لنے کے سوا کوئی چارہ نہ ہوا کرتا تھا۔‬
‫رسول کی دعوت کسسو اگسسر وہ قسسوم قبسسول کسسر لیسستی تسسو اسسے دنیسسا ہی میسسں‬
‫سرفراز کر دیسا جاتسا ت ھا۔ سسسیدنا موسسسی‪ ،‬یسونس اور محمسسد علی ہم الصسلوۃ‬
‫والسلم کی اقوام اس کی مثال ہیں۔ اگر کوئی قوم رسول کی دعوت کسسے‬
‫مقابلے میں سرکشی کا رویہ اختیار کرتی تو انہیں آخرت کے ساتھ ساتھ دنیسسا‬
‫میں بھی عذاب دے دیا جاتا تھا۔ سیدنا نسسوح‪ ،‬ہود‪ ،‬صسسالح‪ ،‬ابراہیسسم‪ ،‬لسسوط اور‬
‫شعیب علیہم الصلوۃ والسلم کی اقوام اس کی مثال ہیں۔‬
‫اس طریقے سے یہ اقوام اللہ تعالی کے جزا و سزا کے آخسسرت کسے قسسانون کسا‬
‫ایک عملی ثبوت بن جایا کرتی تھیں۔ یہ قانون اتنا واضسح کسر دیسا گیسا ہے کسہ‬
‫تورات اور قرآن کا بنیادی موضوع ہی یہی قانون ہے۔ اس موضوع پر ہم نسے‬
‫ان اقوام کے علقوں سے متعلق اپنے سفرنامے میں تفصیل س سے بحسسث کسسی‬
‫ہے۔‬
‫اگر رسول کے پیروکار کم تعداد میں ہوتے تو ایمان نہ لنے والوں پر یہ عذاب‬
‫قدرتی آفات کی صورت میں آیا کرتا تھا۔ اگر ان پیروکاروں کی تعداد زیسسادہ‬
‫ہوتی تسسو پھہہر یسہ عسسذاب رسسسول کسے پیروکسسار‪ ،‬جنہیسسں یسہ اقسسوام نہ ہایت حقیسسر‬
‫‪145‬‬

‫سمجھتی تھیں‪ ،‬کی تلسسواروں کسے ذریعسے آیسسا کرتسسا ت ھا۔ سسسیدنا موسسسی علیسہ‬
‫الصلوۃ والسلم پر ایمان لنے والے بنی اسرائیل کی تلسسواروں ک سے ذریع سے ی سہ‬
‫عذاب موجودہ اردن‪ ،‬شام اور فلسطین کی اقوام پر نازل ہوا۔‬
‫محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے مقابلے میں سرکشی کسا رویسہ‬
‫اختیار کرنے والے گروہوں میں سے بنسسی اسسسماعیل کسے مشسسرکین عسسرب کسسو‬
‫موت کی سزا دی گئی۔ اگرچہ اس سزا پر عمل درآمد کی نسسوبت نہیسسں آئی‬
‫کیونکہ انہوں نے اسلم قبول کر لیا تھا جبکہ عرب اور روم کے یہود و نصسساری‬
‫پر یہ سزا عائد کی گئی کہ ان کی حکومت کو ختم کر دیا جائے۔‬
‫انہی یہود کا ایسسک گسسروہ بنسسو قریظسہ ت ھے جسسس نسے رسسسول کسے مقسسابلے میسسں‬
‫سرکشی کی انتہا کر دی تھی جس کی وجہ سے ان پر و ہی سسسزا نافسسذ کسسی‬
‫گئی جو اصل ً مشرکین بنی اسماعیل کے لئے تھے۔ دنیا میں جزا و سزا کا یسسہ‬
‫قانون محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم پسسر نبسسوت ک سے خسساتمے ک سے‬
‫ساتھ ہی ختم ہو گیا۔ یہ ایک استثنائی قانون تھا اور اس سے اسلم کا دائمی‬
‫قانون اخذ کرنا درست طرز عمل نہیں ہے۔‬
‫بنو قریظہ کے بیوی بچوں کو بھی ہمیشہ کے لئے غلم نہ بنایا گیا تھا۔ ان سب‬
‫کو مکاتبت کا پورا حق حاصل تھا۔ ان میں سے ایک خاتون ریحانہ رضی اللسسہ‬
‫عنہا رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم کسے حصسے میسں آئی تھیسں۔ آپ نسے‬
‫انہیں آزاد کر کے ان سے نکاح کر لیا اور ان کا مہر بسسارہ اوقی سہ چانسسدی مقسسرر‬
‫فرمایا جو کہ دیگر ازواج مطہرات کا مہر بھی تھا۔ )دیکھئے طبقات ابن سعد‬
‫ذکر ازواج النبی(۔‬
‫اس کا نتیجہ یہ نکل کہ صحابہ کرام میں ان خسسواتین اور بچسسوں کسسو آزاد کرنسے‬
‫کی ترغیب پیدا ہوئی اور انہیں آہستہ آہستہ آزاد کر دیا گیسسا۔ ب ہت سسے صسسحابہ‬
‫نے ان خواتین کو آزاد کر کے ان سے نکاح کر لیا۔ بنو قریظ سہ کسسی جسسو نسسسل‬
‫مسلم معاشسسرے میسسں موجسسود ت ھی‪ ،‬ان میسسں عطیسہ القرظسسی ‪ ،‬عبسسدالرح ٰمن‬
‫القرظی‪ ،‬محمد بن کعب القرظی اور رفاعہ القرظی رضی اللہ عنہم کا ذکر‬
‫ملتا ہے۔ ان کا ذکر اس لئے بطور خاص ملتا ہے کسہ یسہ حضسسرات رسسسول اللسہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی حدیث کی تعلیم میں مشغول رہے ہیں۔‬

‫جنگ خندق س ے صلح حدیبی ہ تک کا زمان ہ‬
‫‪ .29‬سریہ عبداللہ بن عتیک )‪ :(5H / 626CE‬مدینہ سے جل وطن ہوجسسانے وال سے بنسسو‬
‫قینقاع اور بنو نضیر اب خیبر میں آباد تھے۔ ان کا ایک سردار ابورافع سسسلم‬
‫بن ابی الحقیق مشرکین کو مدینہ پر حملہ آور ہونے کسسی ترغیسسب دین سے میسسں‬
‫پیسسش پیسسش ت ھا۔ اس کسے علوہ وہ مسسسلمان خسسواتین کسے بسسارے میسسں فحسسش‬
‫شاعری بھی کیا کرتا تھا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم نسے ایسسک م ہم‬
‫خیبر کی طرف روانہ کی اور انہیں تاکید کی کہ وہ خواتین اور بچوں کو قتسسل‬
‫نہ کریں۔ اس ٹیم نے ابو رافع کا کام تمام کر دیا۔‬
‫‪ .30‬سریہ محمد بن مسلمہ )‪ :(6H / 627CE‬نجد کے علقے میں بنو بکر بن کلب‬
‫مسلمانوں پر حملے کی تیاری کر رہے تھے۔ رسول الل سہ صسسلی الل سہ علیسہ و ٰال سہ‬
‫وسلم نے سیدنا محمد بن مسلمہ رضی اللہ عنہ کی قیادت میسسں تیسسس افسسراد‬
‫پر مشتمل ایک دستہ ان کی طرف روانہ کیا۔ ان کسے حملسے کسے نستیجے میسں‬
‫دشمن کے تمام افراد اپنا مال و اسباب چھوڑ کر بھاگ نکلے۔‬
‫بنو حنیفہ کے ایک سردار ثمامہ بن اثال حنفی گرفتار ہوئے۔ چونکہ مسسدینہ میسسں‬
‫جیل موجود نہ تھی اس وجہ سے انہیں مسجد نبوی کے ایک ستون سے بانسسدھ‬
‫‪146‬‬

‫دیا گیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم تشریف لئے تو انہوں نے فدیہ دے‬
‫کر رہا ہونے کی پیشکش کی۔ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے بغیر کسی‬
‫فدیہ کے انہیں رہا کر دیا۔ انہوں نے باہر جا کر غسل کیا اور آ کر اسلم قبسسول‬
‫کر لیا۔‬
‫اہل مکہ کے لئے غلے کی زیادہ تر فراہمی یمامہ سے ہوا کرتسسی ت ھی۔ اس کسے‬
‫بعد ثمامہ نے اہل مکہ کو غلسہ کسسی سسسپلئی روک دی۔ اس پسسر قریسسش سسسخت‬
‫مشکل میں پڑ گئے اور انہوں نے حضسور صسلی اللسہ علیسہ وسسسلم سسے رشسستے‬
‫داری کا واسطہ دے کر درخواست کی کہ آپ ثمامہ کو غل سے کسسی فراہمسسی کسسا‬
‫حکم دیں۔ آپ نے اس درخواست کو قبول کرتے ہوئے ان ک سے لئے غل سے کسسی‬
‫سپلئی بحال کروا دی۔‬
‫‪ .31‬غزوہ بنو لحیان )‪ :(6H / 627CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے حسسادثہ‬
‫رجیع کا بدلہ لینے کے لئے ایک لشکر لے کر بنو لحیان پر چڑ ھائی کسسر دی۔ ی سہ‬
‫لوگ پہاڑوں میں بھاگ نکلے او جنگ کی نوبت نہ آئی۔‬
‫‪ .32‬سریہ غمر )‪ :(6H / 627CE‬سیدنا عکاشہ بن محصن رضی اللہ عنہ کی قیادت‬
‫میں یہ مہم بنو اسد کے لٹیروں کی طرف بھیجی گئی۔ دشمن ان کی آمد کا‬
‫سن کر فرار ہو گیا اور جنگ کی نوبت نہ آئی۔‬
‫‪ .33‬سریہ ذوالقصہ )‪ :(6H / 627CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سسسیدنا‬
‫محمد بن مسلمہ رضی اللہ عن سہ کسسی قیسسادت میسسں دس افسسراد کسسا ایسسک دسسستہ‬
‫معلومات کے حصول کے لئے بنو ثعلبہ کی طرف روانہ فرمایا۔ رات کے وقسست‬
‫دشمن نے ان پر حملہ کیا اور سوائے محمد بن مسسسلمہ ک سے تمسسام صسسحابہ کسسو‬
‫شہید کر دیا۔ آپ بھی زخمی حالت میں واپس آئے۔‬
‫‪ .34‬سریہ ذوالقصہ دوم )‪ :(6H / 627CE‬اس کے ایک ماہ بعد رسول اللہ صلی اللہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے سیدنا ابوعبیدہ رضی اللہ عنہ کی زیر قیادت ایک دستہ بنسسو‬
‫ثعلبہ کی طرف بھیجا۔ دشمن نے پہاڑوں میں پنسساہ لسسی اور ان کسسا ایسسک آدمسسی‬
‫قیدی بنا۔ یہ صاحب بعد میں مسلمان ہو گئے۔‬
‫‪ .35‬سریہ جموم )‪ :(6H / 627CE‬حضور صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے سیدنا زید بن‬
‫حارثہ رضی اللہ عنہ کی قیادت میں ایک لشکر جموم کی طسسرف بھیجسسا۔ اس‬
‫غزوے میں ایک خاتون حلیمہ جنگی قیدی بنیسسں۔ رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ‬
‫وسلم نے انہیں آزاد کر کے ان کی شادی کروا دی۔‬
‫‪ .36‬سریہ عیص )‪ :(6H / 627CE‬یہ مہم قریش کے ایک قافلے کسسی طسسرف بھیجسسی‬
‫گئی۔ اس قافلے کے سربراہ ابوالعاص رضی اللہ عنہ تھے جو رسول اللہ صلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے داماد تھے۔ یہ وہاں سے بھاگ کر مدینہ پہنچ سے اور اپنسسی‬
‫بیوی سیدہ زینب رضی اللہ عنہا کی پناہ حاصل کر کے ی سہ درخواسسست کسسی ک سہ‬
‫ان کے قافلے کا مال واپس کیا جائے۔ حضور صسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسلم نسے‬
‫اس معاملے میں صحابہ سے مال واپس کرنے کی درخواست کی۔ صحابہ نسسے‬
‫کچھ زیادہ ہی مال ان کے حوالے کسسر دیسسا۔ یسہ مسال لسے کسر مکسہ پہنچسے اور ہر‬
‫شخص کو اس کا حصہ ادا کرنے ک سے بعسسد مسسدینہ واپسسس آئے اور مسسسلمان ہو‬
‫گئے۔‬
‫‪ .37‬سریہ طرف )‪ :(6H / 627CE‬یہ مہم بھی سیدنا زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کی‬
‫قیادت میں بنو ثعلبہ کے راہزنوں کی طرف بھیجی گئی۔ اس میں جنگ نہ ہو‬
‫سکی۔‬
‫‪147‬‬

‫‪ .38‬سریہ وادی القری )‪ :(6H / 627CE‬اس م ہم کسسا مقصسسد دشسسمن کسسی نقسسل و‬
‫حرکت سے متعلق معلومات حاصل کرنا تھا۔ دشمن نے گھات لگا کر صسسحابہ‬
‫پر حملہ کر دیا اور بارہ میں سے نو افراد شہید ہو گئے۔ ٹیسسم کسے امیسسر سسسیدنا‬
‫زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ اپنے دو ساتھیوں کے ساتھ واپس پہنچے۔‬
‫‪ .39‬سریہ سیف البحر )‪ :(6H / 627CE‬رسول اللہ صلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے‬
‫قریش کے ایک تجارتی قافلے کی نقل و حرکت سے متعلق معلومات حاصل‬
‫کرنے کے لئے سیدنا ابوعبیدہ رضی اللہ عنہ کسسو تیسسن سسسو سسسواروں ک سے سسساتھ‬
‫ساحل کی طرف بھیجا۔ راستے میں ان حضرات کو خوراک کی شدید قلسست‬
‫کا سامنا کرنا پڑا۔ اللہ تعالی نے انہیں ایک وہیل مچھلی عطا کی جسے پسسورے‬
‫لشکر نے کئی دن تک کھایا۔‬
‫(‪ :‬اس مہم کے سسسربراہ سسسیدنا عبسسدالرح ٰمن بسسن‬
‫‪ .40‬سریہ بنی کلب )‪6H / 627CE‬‬
‫عوف رضی اللہ عنہ تھے۔ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ک سے‬
‫حکم کے مطابق بنو کلب کو اسلم کی دعوت دی۔ انہوں نے یہ دعوت قبسسول‬
‫کر لی جس کے بعد حضور کے حکم ہی کے مطابق ان ہوں ن سے اس قسسوم ک سے‬
‫سردار کی بیٹی سے نکاح کر لیا۔ اس مہم میں جنگ کی نوبت نہیں آئی۔‬
‫‪ .41‬سریہ فدک )‪ :(6H / 627CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو خبر ملسسی‬
‫کہ بنو سعد اور خیبر کے یہود کے درمیان اتحسساد ہوا ہے۔ آپ نسے سسسیدنا علسسی‬
‫المرتضی رضی اللہ عنہ کی قیادت میں دو سو سواروں کو روانہ کیا۔ ان کے‬
‫حملے پر بنو سعد اپنے مویشی چھوڑ کر ب ھاگ نکل سے۔ اس م ہم میسسں کسسوئی‬
‫جنگی قیدی ہاتھ نہیں آیا۔‬
‫‪ .42‬سریہ بنو فزارہ )‪ :(6H / 627CE‬بنو فزارہ کے کچھ لوگوں نے رسول اللہ صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو قتل کرنے کا منصوبہ بنایا۔ اس منصوبے کے پیچھے ایک‬
‫عورت ام قرفہ کا ہاتھ تھا۔ اس نے تیس شہسواروں کو خاص طور پسسر اسسسی‬
‫مقصد کے لئے تیار کیا تھا۔ آپ نے ان کی جانب سیدنا ابسسوبکر صسسدیق رضسسی‬
‫اللہ عنہ کی قیادت میں ایک لشکر بھیجا۔ انہوں نے تیس کے تیسسس افسسراد کسسو‬
‫قتل کر دیا۔ اس جنگ میں ام قرفہ کی بیٹی گرفتار ہوئی۔ رسول اللسہ صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اسسے ر ہا کرنسے کسے بسسدلے مکسہ سسے متعسسدد مسسسلمان‬
‫قیدیوں کو رہا کروا لیا۔ )مسلم‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(4573‬‬
‫‪ .43‬سریہ عرینین )‪ :(6H / 627CE‬عکل اور عرینہ کے کچھ افراد‪ ،‬جو دراصل ڈاکو‬
‫تھے‪ ،‬نے مدینہ میں آ کر بظاہر اسلم قبول کیسسا۔ حضسسور صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم نے انہیں مدینہ کے باہر ایک چراگاہ میں بھیج دیا۔ انہوں ن سے چراگسساہ ک سے‬
‫رکھوالوں کے ہاتھ پاؤں کاٹ ڈالے اور ان کی آنکھوں میں گرم سلئیاں پھیسسر‬
‫دیں۔ اس کے بعد وہاں سے یہ اونٹ لے کر فرار ہو گئے۔ رسول اللہ صلی الل سہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم سیدنا کرز بن جابر فہری رضی اللہ عنہ کی قیادت میں بیسسس‬
‫صحابہ کو ان کے پیچھے روانہ کیا۔ انہیں گرفتار کسسر ک سے قصسساص میسسں ان کسے‬
‫ساتھ وہی سلوک کیا گیا جو انہوں نے چرواہوں کے ساتھ کیا تھا۔‬
‫‪ .44‬صلح حدیبیہ )‪ :(6H / 628CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم چسسودہ سسسو‬
‫صحابہ کے ساتھ مکہ کی طرف عمرے کے ارادے سے روان سہ ہوئے۔ قریسسش ن سے‬
‫خالد بن ولید )رضی اللہ عنہ( کو‪ ،‬جسسو اب ھی مسسسلمان ن سہ ہوئے ت ھے‪ ،‬آپ کسسو‬
‫روکنے کے لئے بھیجا۔ مسلمان ان کا مقابلہ کرنے کی بجسسائے ایسسک طویسسل اور‬
‫دشوار گزار راستے سے گزر کر حدیبیہ کسے مقسسام پسسر پہنچسے۔ قریسسش کسے دو‬
‫غلم فرار ہو کر مسلمانوں سے آ ملے جنہیں آزاد کر دیا گیا۔‬
‫‪148‬‬

‫حضور نبی کریم صلی اللہ علی و ٰالہ وسلم نے قریش کو صلح کسسی پیشسسکش‬
‫کی جسے انہوں نے کچھ رد و قدح کے بعد قبول کر لیا۔ اسسسی دوران ان کسسے‬
‫بعض پرجوش نوجوانوں نے‪ ،‬جن کی تعداد ستر یسسا اسسسی ت ھی‪ ،‬شسسب خسسون‬
‫مارنے کی کوشش کی لیکن سیدنا محمد بن مسلمہ رضی اللہ عنسہ نسے پ ہرے‬
‫داروں کی مدد سے انہیں گرفتار کر لیا۔ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم نسے‬
‫ان سب کو بلمعاوضہ آزاد کر دینے کا حکم دیسسا۔ اس واقعسہ کسے بعسسد قریسسش‬
‫اور مسلمانوں کے درمیان دس سال تک جنگ نہ کرنے کا معاہدہ طے پا گیا۔‬

‫صلح حدیبی ہ س ے فتح مک ہ تک کا زمان ہ‬
‫‪ .45‬سریہ بنو جذام )‪ :(7H / 628CE‬قبیلہ بنو جذام کے بعض افراد نے رسسسول الل سہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے قاصد سیدنا دحیہ کلبی رضی الل سہ عن سہ پسسر حمل سہ‬
‫کر کے ان سسے وہ تحسسائف چھیسن لئے‪ ،‬جسسو قیصسسر روم ہرقسسل نسے آپ کسے لئے‬
‫بھیجے تھے۔ حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سیدنا زید بن حارثہ‬
‫رضی اللہ عنہ کی قیادت میں پانچ سو صحابہ کا لشکر ان کسسی طسسرف روان سہ‬
‫کیا۔ قبیلہ جذام کو شکست ہوئی اور ان ک سے سسسو ک سے قریسسب افسسراد جنگسسی‬
‫قیدی بنے۔ ان کے ایک سردار زید بن رفاعہ جسسذامی رضسسی اللسہ عنسہ نسے نسسبی‬
‫کریم صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہو کسسر ان کسسی ر ہائی‬
‫کی درخواست کی جس پر ان تمام جنگی قیدیوں کو رہا کر دیا گیا۔‬
‫‪ .46‬غزوہ ذی قرد )‪ :(7H / 628CE‬یہ غزوہ بنو فزارہ کے کچھ ڈاکوؤں کے خلف تھا‬
‫جو مدینہ کی چراگاہوں پر اونسٹ لسسوٹنے کسے لئے حملسہ آور ہوئے ت ھے۔ سسیدنا‬
‫سلمہ بن الکوع رضی اللہ عنہ کسسی غیسسر معمسسولی شسسجاعت کسے بسساعث یسہ نسہ‬
‫صرف اونٹ چھوڑ کر بھاگے بلکہ اپنا بہت سا اسلحہ اور ساز و سامان چ ھوڑ‬
‫گئے۔ سلمہ ان کا پیچھا کرنا چاہتے تھے لیکن حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم‬
‫نے ان کے تعاقب سے منع فرما دیا کیونکہ یہ اپنے قبیلے میں واپس پہنچ چکسسے‬
‫تھے۔‬
‫‪ .47‬غزوہ خیبر )‪ :(7H / 628CE‬مدینہ سے جلوطن ہو کسر ی ہودی اپنسے ہم مسذہب‬
‫بھائیوں کے پاس خیبر میں آباد ہو چکے تھے۔ ی ہاں ان ہوں ن سے مضسسبوط قلع سے‬
‫تعمیر کر لئے تھے اور مدینہ پر حملہ آور ہونے کی تیاری کرنے میسسں مصسسروف‬
‫تھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کسسی یلغسسار کسے نسستیجے میسسں ان کسے‬
‫بعض قلعے بغیر جنگ کے فتح ہو گئے۔ ان لوگوں کو جنگسسی قیسسدی نہیسسں بنایسسا‬
‫گیا۔‬
‫قلعہ قموص سیدنا علی رضی اللہ عنہ کی غیر معمولی بہادری کے ساتھ فتسسح‬
‫ہوا۔ یہاں کے جنگی قیدیوں کو غلم بنایا گیا۔ ان میسسں سسے یہہہود کسے سسسردار‬
‫حی بن اخطب کی بیٹی صفیہ رضی اللہ عنہا بھی تھیں۔ رسول اللہ صلی اللہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے انہیں آزاد کر کے ان سے نکاح کر لیا۔ اس طسسرح سسسے آپ‬
‫نے ان میں سسرالی رشتہ قائم فرما کر انہیں اپنے اپنے غلم آزاد کرن سے کسسی‬
‫ترغیب دی۔ اس کے بعد وادی القسری میسں ایسک اور جنسگ ہوئی جسس میسں‬
‫جنگی قیدی نہیں بنائے گئے۔ بعد ازاں فدک اور تیماء کے علقے کسسے یہودیسسوں‬
‫نے خود صلح کی پیشکش کی جسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نسسے‬
‫قبول کرتے ہوئے ان کے جان و مال کو محفوظ قرار دیا۔‬
‫‪ .48‬سریہ ابان بن سعید )‪ :(7H / 628CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم ن سے‬
‫خیبر روانگی کے ساتھ ہی مدینہ کو نجد کے ڈاکوؤں سے محفسسوظ رکھن سے ک سے‬
‫‪149‬‬

‫لئے ایک مہم نجد کی طرف بھی روانہ کی جس کے سسربراہ سسیدنا ابسان بسن‬
‫سعید رضی اللہ عنہ تھے۔ اس مہم کی تفصیل نامعلوم ہے۔‬
‫‪ .49‬غزوہ ذات الرقاع )‪ :(7H / 628CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم کسو یسہ‬
‫خبر ملی کہ نجد کے خانہ بدوش بدوؤں نے اکٹھے ہو کسر مسدینہ پسر حملسے کسی‬
‫تیاریاں شروع کی ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے چار یسسا سسسات‬
‫سو کا ایک لشکر لے کر نجد کی طرف رخ کیا۔ اس مہم میں باقاعسسدہ جنسسگ‬
‫نہ ہوئی البتہ ایک دو افراد گرفتار ضرور ہوئے جنہیں اسلم قبول کر لینسے کسے‬
‫باعث آزاد کر دیا گیسسا۔ اس غسسزوے کسے نسستیجے میسسں خسسانہ بسسدوش ڈاکسسوؤں پسسر‬
‫مسلمانوں کا رعب و دبدبہ قائم ہو گیا جس نے آئندہ ان علقوں میں امسسن و‬
‫امان قائم کرنے کی بنیاد ڈال دی۔‬
‫‪ .50‬سریہ قدید )‪ :(7H / 628CE‬یہ سریہ قدید میں بنو ملوح کی جسسانب روانسہ کیسسا‬
‫گیا۔ انہوں نے بعض صحابہ کو قتل کر دیا تھا۔ جنگ میں دشمن کے بہت سسسے‬
‫افراد قتل ہوئے۔ اس جنگ میں بھی جنگی قیدی نہیں بنائے گئے۔ دشسسمن نسسے‬
‫مسلمانوں پر پلٹ کر حملے کی کوشش کی لیکن شسسدید بسسارش کسے بسساعث‬
‫ان کے اور مسلمانوں کے درمیان سیلب حائل ہو گیا۔‬
‫‪ .51‬سریہ تربہ )‪ :(7H / 628CE‬یہ مہم سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کی قیادت میں بنو‬
‫ہوازن کی طرف روانہ کی گئی۔ اس میں جنگ کی نوبت نہیں آئی۔‬
‫‪ .52‬سریہ بشیر بن سعد )‪ :(7H / 629CE‬بنو مرہ کی طرف سیدنا بشیر بن سسعد‬
‫رضی اللسہ عنسہ کسی زیسر قیسادت ایسک لشسکر روانسہ کیسا گیسا۔ اس جنسگ میسں‬
‫مسلمانوں کا بڑا نقصان ہوا اور سوائے امیر لشکر کے سب کے سسسب ش سہید‬
‫کر دیے گئے۔‬
‫‪ .53‬سریہ میفعہ )‪ :(7H / 629CE‬اس سریے کا مقصد بنو عسسوال اور بنسو ثعلبسہ کسو‬
‫مطیع بنانا تھا۔ اس جنگ میں دشمن کے سب کے سب سپاہی مارے گئے۔‬
‫‪ .54‬سریہ خیبر )‪ :(7H / 629CE‬بنو غطفان کا ایک گروہ مدینہ پر حملہ کی تیاریوں‬
‫میں مشغول تھا۔ رسول اللہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے ان کسسی جسسانب‬
‫سیدنا عبداللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہ کی قیادت میں ایک لشکر بھیجسسا جسسس‬
‫نے تمام کے تمام حملہ آوروں کو قتل کر دیا۔‬
‫‪ .55‬سریہ یمن و جبار )‪ :(7H / 629CE‬نبی کریم صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے تیسسن‬
‫سو صحابہ کو سیدنا بشیر بن کعب انصاری رضسسی اللسہ عنسہ کسسی سسسرکردگی‬
‫میں بنو غطفان کی طرف بھیجا جو مدینہ پر حملہ آور ہونے کسسی تیسساری کسسر‬
‫رہے تھے۔ دشمن مسلمانوں کو دیکسھ کسسر ب ھاگ ک ھڑا ہوا۔ ان کسے دو افسسراد‬
‫قیدی بنائے گئے جنہوں نے اسلم قبول کر لیا۔‬
‫‪ .56‬سریہ غابہ )‪ :(7H / 629CE‬قبیلہ جشم کا ایک شخص کچھ افراد کو لے کر غابہ‬
‫کے مقام پر آیا۔ وہ بنو قیس کو مسلمانوں کے خلف جنگ کے لئے تیسسار کرنسسا‬
‫چاہتا تھا۔ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے صرف تین افراد کسسی ایسسک ٹیسسم‬
‫ان کی طرف بھیجی جنہوں نے حکمت عملی سے ان شرپسندوں کسسا خسساتمہ‬
‫کر دیا۔‬
‫‪ .57‬سریہ ابو العوجاء )‪ :(7H / 629CE‬یسہ سسسیدنا ابوالعوجسساء رضسسی اللسہ عنسہ کسسی‬
‫سرکردگی میں ایک دعوتی مہم تھی جو بنو سلیم کی طرف روانہ کی گئی۔‬
‫انہوں نے جواب میں جنگ کی جس کے نتیجے میسسں دو افسسراد قیسسدی بنسے۔ ان‬
‫کی تفصیل معلوم نہیں ہو سکی۔‬
‫‪150‬‬

‫‪ .58‬سریہ غالب بن عبداللہ )‪ :(8H / 629CE‬یہ مہم فدک کی طرف روانہ کی گئی۔‬
‫اس میں دشمن کے بہت سے افراد قتل ہوئے لیکن جنگسسی قیسسدی نہیسسں بنسسائے‬
‫گئے۔‬
‫‪ .59‬سریہ ذات اطلح )‪ :(8H / 629CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے پندرہ‬
‫افراد کی ایک ٹیم کو سیدنا کعب بن عمیر رضی الل سہ عن سہ کسسی قیسسادت میسسں‬
‫معلومات کے حصول کے لئے بھیجا۔ ان کا سامنا دشمن سے ہوا جس نسسے ان‬
‫تمام صحابہ کو شہید کر دیا۔‬
‫‪ .60‬سریہ ذات عرق )‪ :(8H / 629CE‬یہ مہم بنو ہوازن کی طرف روان سہ کسسی گئی۔‬
‫اس میں جنگ کی نوبت نہیں آئی۔‬
‫‪ .61‬سریہ موتہ )‪ :(8H / 629CE‬یہ تین ہزار افراد پر مشتمل ایک بڑا لشکر تھا جو‬
‫موجودہ اردن کے علقے میں بھیجا گیا۔ اس لشکر کا سامنا قیصسسر روم کسسی‬
‫ایک لکھ فوج سے ہو گیا۔ لشکر کے تین بسسڑے کمان سڈر سسسیدنا زیسسد بسسن حسسارثہ‪،‬‬
‫جعفر طیار اور عبداللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہم شسہید ہو گئے۔ اس کسے بعسسد‬
‫سیدنا خالد بن ولید رضی اللہ عنہ نے کمان سنبھالی اور لشکر کے بڑے حصے‬
‫کو بچا کر لے آئے۔ اس لشکر کشی کے نتیجے میں شمالی عرب کے مختلف‬
‫قبائل پر زبردست رعب قائم ہو گیا کیونکہ مسلمانوں نے پہلی مرتبہ دنیا کی‬
‫سب سے بڑی سپر پاور قیصر روم کی افواج کو چیلنج کیا تھا۔‬
‫‪ .62‬سریہ ذات السلسل )‪ :(8H / 629CE‬یہ مہم شام کسسی سسسرحد پسسر رہن سے والسے‬
‫قبائل کی طرف سیدنا عمرو بن عاص رضی اللہ عنہ کی قیادت میں بھیجسی‬
‫گئی۔ اس میں جنگ کی نوبت نہیں آئی البتہ بہت سے قبائل اسلمی حکومت‬
‫کے مطیع ہو گئے۔‬
‫‪ .63‬سریہ خضرہ )‪ :(8H / 629CE‬خضرہ کے علقے میں بنو غطفان نے مسلمانوں‬
‫پر حملے کے لئے ایک فوج جمع کرنا شروع کی تھی۔ رسسسول الل سہ صسسلی الل سہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے ایک لشکر ان کی طرف بھیجا جس نے ان پر حملہ کر کے‬
‫ان کی سرکوبی کی۔ اس جھڑپ میں بعض جنگی قیسسدی ہاتھ آئے جسسن کسسی‬
‫تفصیل معلوم نہیں ہو سکی۔‬
‫‪ .64‬غزوہ فتح مکہ )‪ :(8H / 630CE‬مسلمانوں اور قریش کے درمیان حسسدیبیہ میسسں‬
‫دس سال تک جنگ نہ کرنے کا معا ہدہ ہوا ت ھا۔ قریسسش نسے اس معا ہدے کسسی‬
‫خلف ورزی کرتے ہوئے مسلمانوں کے حلیف قبیلے بنو خزاعسہ پسسر حملسہ کیسسا۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے اس معا ہدے کسسی خلف ورزی ک سے‬
‫جرم میں مکہ پر حملے کی تیاری شروع کر دی۔ جب قریش کو اس کا علم‬
‫ہوا تو ان کے سردار ابوسفیان رضی اللہ عنہ معاہدے کی تجدید کے لئے مسسدینہ‬
‫آئے لیکن انہیں انکار کر دیا گیا۔ اس کے بعد حضور نے دس ہزار صسسحابہ ک سے‬
‫لشکر کے ساتھ مکہ پر حملہ کیا اور بغیر جنگ کے اسے فتح کر لیسسا۔ مک سہ ک سے‬
‫تمام افراد کو فتح کے بعد قیدی بنانے کی بجائے انہیں بطور احسان آزاد کسسر‬
‫دیا گیا۔‬

‫فتح مک ہ ک ے بعد کی جنگیں‬
‫‪ .65‬غزوہ حنین )‪ :(8H / 630CE‬یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ک سے زمسسانے‬
‫کسی آخسسری بسسڑی جنسسگ ت ھی جسسس میسسں بنسسو ہوازن اور بنسسو ثقیسسف مسسل کسسر‬
‫مسلمانوں کے مقابلے پر آئے اور ابتدائی کامیابی کے باوجود انہیسسں شکسسست‬
‫‪151‬‬

‫کا منہ دیکھنا پڑا۔ اس جنگ میں چھ ہزار افراد کو جنگی قیدی بنایسسا گیسسا۔ ان‬
‫قیدیوں کو تقسیم کیا جا چکا تھا کہ بنو ہوازن کا وفد مسلمان ہو کسر آ گیسا۔‬
‫انہوں نے اپنے قیدیوں کو آزاد کرنے کی درخواست کی۔ رسول اللہ صلی اللسہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے اپنے حصے کے قیدیوں کو فورا ً آزاد کر دیسسا اور اس موقسسع‬
‫پر نئے مسلمان ہونے والے افراد کے پاس جا کسسر انہیسسں قسسائل کیسسا ک سہ وہ اپن سے‬
‫حصے کے قیدیوں کو آزاد کر دیں۔ اس طرح سے ‪ 6000‬جنگسسی قیسسدیوں کسسو‬
‫آزادی نصیب ہوئی۔‬
‫‪ .66‬سریہ عینیہ بن حصن الفزاری )‪ :(9H / 630CE‬ابھی فتح مکہ کو چنسسد ہی مسساہ‬
‫گزرے تھے کہ بنو تمیم نے بغاوت کر دی۔ ان کی بغاوت کو فرو کرنے کسے لئے‬
‫نبی کریم صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سیدنا عینیہ بن حصن رضی اللہ عنہ کو‬
‫ان کی طرف بھیجا۔ اس جنگ میں ساٹھ کے قریب جنگی قیسسدی بنسسائے گئے۔‬
‫بنی تمیم کے توبہ کر لینے کے بعد حضور کے حکم سسے ان سسسب کسسو آزاد کسسر‬
‫دیا گیا۔‬
‫‪ .67‬سریہ قطبہ بن عامر )‪ :(9H / 630CE‬یہ مہم قبیلہ خثعم کی طسسرف روان سہ کسسی‬
‫گئی اور فریقین کے خاصے افراد اس میں زخمی ہوئے اور بعسسض قیسسد ہوئے‬
‫جن کی تفصیل معلوم نہیں ہو سکی۔‬
‫‪ .68‬سریہ ضحاک بن سفیان الکلبی )‪ :(9H / 630CE‬یہ مہم بنو کلب کسسی طسسرف‬
‫بھیجی گئی اور اس جنگ میں ایک آدمی مارا گیسسا لیکسسن جنگسسی قیسسدی نہیسسں‬
‫بنائے گئے۔‬
‫‪ .69‬سریہ علقمہ بن مجرزمدلجی )‪ :(9H / 630CE‬حبشہ کے کچھ بحری قزاقوں نے‬
‫مکہ پر حملہ آور ہونے کے ارادے سے ساحل کے قریسسب لشسسکر اکٹ ھا کیسسا ت ھا۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ان کی طرف سیدنا علقمہ رضی اللسہ‬
‫عنہ کی قیادت میں تین سو افراد کا لشکر بھیجا۔ ان کسسی آمسسد کسسا سسسن کسسر‬
‫حبشی سمندر میں فرار ہو گئے۔ مسلمانوں نے ایک جزیرے تک ان کا تعاقب‬
‫کیا لیکن سمندر کے ماہر ہونے کی وجہ سے یہ لوگ بچ نکلے۔‬
‫‪ .70‬سسسریہ بنسسو طسے )‪ :(9H / 630CE‬سسسیدنا علسسی المرتضسسی رضسسی اللسہ عنسہ کسسی‬
‫سرکردگی میں بنو طے کی طرف ایک م ہم روانسہ کسسی گئی۔ اس م ہم میسسں‬
‫بہت سے جنگی قیدی بنائے گئے جن میں مشہور عرب سخی حاتم طائی کی‬
‫بیٹی بھی شامل تھیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے ان سسسب کسسو‬
‫آزاد کر دیا۔‬
‫‪ .71‬غزوہ تبوک )‪ :(9H / 630CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو اطلع ملی‬
‫کہ قیصر روم کا ایک بڑا لشکر مدینہ پر حملے کے لئے آ رہا ہے۔ آپ نسسے پیسسش‬
‫قدمی کرتے ہوئے تیس ہزار صحابہ کے ساتھ شمال کی طرف کوچ کیا۔ تبوک‬
‫کے مقام پر پہنچ کر معلسسوم ہوا ک سہ رومیسسوں اور ان ک سے حسسامیوں کسسا لشسسکر‬
‫مقابلے پر نہیں آ رہا۔ یہاں ٹھہر کر رسول اللہ صلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے‬
‫تیما‪ ،‬دومۃ الجندل‪ ،‬جرباء‪ ،‬اذرح اور ایلہ کی طرف مہمات روانہ کیں جن میں‬
‫ان علقوں کے حکمرانوں نے آپ کی اطاعت قبول کسسر لسسی۔ اس م ہم میسسں‬
‫کوئی جنگی قیدی نہیں بنایا گیا۔ اس لشکر کشی کا نسستیجہ ی سہ نکل ک سہ عسسرب‬
‫اور روم کے درمیان نیوٹرل علقہ مسلمانوں کے زیر نگیسسں آ گیسسا اور ان کسسی‬
‫سرحدیں براہ راست سلطنت روم سے جا ملیں۔‬

‫‪152‬‬

‫‪ .72‬سریہ اسامہ بن زید )‪ :(11H / 632CE‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن سے‬
‫اپنی آخری مہم سیدنا اسامہ بن زید رضی اللہ عنہما کسسی قیسسادت میسسں شسسام‬
‫کی طرف روانہ کی۔ ابھی یہ لشکر مدینہ سے باہر ہی نکل تھا کہ حضسسور نسسبی‬
‫کریم صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم وفسسات پسسا گئے جسسس کسسی وجسہ سسے یسہ لشسسکر‬
‫واپس آ گیا۔ اس لشکر کو دوبارہ سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کسسے دور‬
‫خلفت میں روانہ کیا گیا۔‬

‫ع ہد رسالت ک ے جنگی قیدیوں کا‬
‫تجزی ہ‬
‫اگر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے کی تمام جنگوں کا جائزہ لیا جائے‬
‫تو یہ معلوم ہوتا ہے کہ ‪ 72‬جنگوں میسسں سسے صسسرف ‪ 19‬جنگسسوں میسسں جنگسسی قیسسدی‬
‫مسلمانوں کے ہاتھ آئے۔ ان کے ساتھ جو معاملہ کیا گیا وہ یہ تھا۔‬
‫• دو جنگوں‪ ،‬غزوہ بدر اور سریہ بنو فزارہ کے جنگی قیدیوں کو "اما فداء" کے‬
‫اصول کے تحت فدیہ لے کر رہا کیا گیا۔ بدر کے قیدیوں سے یا تو رقم لسسی گئی‬
‫یا پھر کچھ خدمات جیسے بچوں کی تعلیم وغیرہ کو بطور فدیہ قبسسول کیسسا گیسسا‬
‫جبکہ بنو فزارہ کے قیدیوں کے بدلے مسلمان قیدیوں کسو آزاد کروایسسا گیسا۔ اس‬
‫کے علوہ ایک اور موقع پر بنی عقیسسل کسے مشسسرک قیسسدیوں کسے بسسدلے آپ نسے‬
‫مسلم قیدیوں کا تبادلہ کروایا۔ )ابن ابی شیبہ‪ ،‬حدیث ‪(33920‬‬
‫• تیرہ جنگوں کے قیدیوں کو "اما منا" کے اصول کے تحسست بلمعاوض سہ آزاد کسسر‬
‫دیا گیا۔ ان میں سے بڑی جنگوں میں غزوہ بنو قینقاع‪ ،‬بنو نضسسیر‪ ،‬حسسدیبیہ‪ ،‬اور‬
‫فتح مکہ شامل ہیں۔ چھوٹی چ ھوٹی کساروائیوں میسں بسالعموم "امسا منسا" کسے‬
‫اصول کے تحت قیدیوں کو بلمعاوضہ ہی رہا کیا گیا۔‬
‫• صرف چار جنگیں ایسی تھیں جن میں جنگی قیدیوں کو غلم بنایسسا گیسسا۔ ان‬
‫چار جنگوں میں غزوہ بنو عبدالمصطلق‪ ،‬بنسسو قریظسہ‪ ،‬خیسسبر اور حنیسسن شسسامل‬
‫ہیں۔ ان کی تفصیل پر بھی دوبارہ غور فرمائیے‪:‬‬
‫‪ o‬بنو عبدالمصسسطلق‪ :‬رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے بنسسو‬
‫عبدالمصطلق کے سردار کی بیسسٹی سسسیدہ جسسویریہ رضسسی اللسہ عن ہا سسے‬
‫شادی کر کے مسلمانوں کو ترغیب دی کہ وہ ان کے قیدیوں کو آزاد کر‬
‫دیں کیونکہ اب بنو عبدالمصطلق مسلمانوں کے رسسسول ک سے سسسسرالی‬
‫رشتے دار ہو چکے ہیں چنانچہ سو کے قریب خاندانوں کو آزادی نصسسیب‬
‫ہوئی۔‬
‫‪ o‬بنو قریظہ‪ :‬بنو قریظہ کے معاملے میں ب ھی آپ ن سے ی ہی طسسرز عمسسل‬
‫اختیار کیا۔ بنو قریظہ کی خاتون سیدہ ریحانہ رضی اللہ عنہا جسسو حضسسور‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی لونڈی بنی تھیں‪ ،‬آپ نے انہیں آزاد کسسر ک سے‬
‫ان سے نکاح کر لیا۔ صحابہ کرام نے بالعموم بنو قریظہ کی خسسواتین کسسو‬
‫آزاد کر کے ان سے نکاح کیا اور ان کے بچوں کی اپنے بچوں کی طسسرح‬
‫پرورش کی۔ اس کسسا نسستیجہ یسہ نکل کسہ قرظیسسوں میسسں بعسسض ن ہایت ہی‬
‫مخلص اور صاحب علم صحابی پیدا ہوئے جن کسسا ذکسسر اسسسماء الرجسسال‬
‫کی کتب میں موجود ہے۔‬
‫‪ o‬خیبر‪ :‬رسول اللہ صلی اللہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے ی ہاں ب ھی ی ہود کسے‬
‫سردار حیی بن اخطب کی بیٹی سیدہ صفیہ رضی اللہ عنہا س سے شسسادی‬
‫کر کے مسلمانوں کو ترغیسسب دی کسہ وہ خیسسبر کسے قیسسدیوں کسسو آزاد کسسر‬
‫‪153‬‬

‫دیں۔‬
‫‪ o‬حنین‪ :‬یہ وہ جنگ تھی جس میں چھ ہزار کے قریب جنگی قیدیوں کسسو‬
‫گرفتار کیا گیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم ن سے نئے مسسسلمان‬
‫ہونے والے افراد کو ذاتی طور پر قسسائل کیسسا کسہ وہ اپنسے اپنسے حصسے کسے‬
‫قیدیوں کو آزاد کر دیں۔ نہ صرف انہیں آزادی دیں بلکہ غنیمت کسسا مسسال‬
‫بھی بنو ہوازن کو واپس کر دیں چنانچہ انہوں نے ایسا ہی کیا۔‬
‫اس کے علوہ متعدد ایسے واقعات ملتے ہیسسں جسسب رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ‬
‫وسلم کے پاس جنگی قیدی لئے گئے تو آپ نے خود اپنے پاس س سے فسسدیہ ادا کسسر ک سے‬
‫انہیں آزادی عطا فرما دی۔ امام بیہقی نے معرفسۃ السسسنن و الثسسار کسسی کتسساب الج ہاد‬
‫میں ایسے متعدد واقعات بیان کئے ہیں۔‬

‫خلفت راشد ہ کی جنگی م ہمات‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے بعد آپ کے خلفاء راشدین )بشمول عمر بن‬
‫عبدالعزیز علیہ الرحمۃ( کے طرز عمل سے متعلق تاریخی روایات کا جائزہ لیسسا جسسائے‬
‫تو قیدیوں کے بارے میں ان کے یہ اقدامات سامنے آتے ہیں‪:‬‬
‫• عمومی طور پر خلفاء راشدین "اما منا او اما فسسداء" ک سے اصسسول ک سے تحسست‬
‫جنگی قیدیوں کو بلمعاوضہ یا پھر کچھ معاوضہ لے کر رہا کسسر دیسسا کرتسے ت ھے۔‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے دور میں قیدی کا فدیہ ‪ 400‬درہم مقرر کیسسا گیسسا۔‬
‫بسا اوقات اس میں کمی بیشی ب ھی کسسی گئی۔ )دیکھی سے عمسسری‪ ،‬عصسسر الخلف سۃ‬
‫الراشدہ(‬

‫• جنگی قیدیوں کا تبادلہ دشمن کسسی قیسسد میسسں موجسسود اسسسلمی ریاسسست ک سے‬
‫قیدیوں سے کیا جاتا تھا۔‬
‫• بعض موقعوں پر استثنائی طور پسسر جنگسسی قیسسدیوں کسسو غلم ب ھی بنایسسا گیسسا‬
‫لیکن یہ معاملہ عارضی طور پر تھا۔ حکومت کی اطاعت قبول کر لینے پسسر ان‬
‫جنگی قیدیوں کو آزاد کر دیا جاتا تھا۔‬
‫• اسلمی ریاست کے جو شہری جنگی قیدی بن کر دشسسمن کسسی غلمسسی میسسں‬
‫چلے جاتے‪ ،‬خواہ وہ مذہبا ً مسلمان ہوں یا نہ ہوں‪ ،‬انہیں بیت المال سے رقسسم ادا‬
‫کر کے آزاد کروا لیا جاتا تھا۔ اگر وہ قیدی جنگ کسے ذریعسے دوبسسارہ مسسسلمانوں‬
‫کے پاس آ جاتے تو انہیں فورا ً آزاد کر دیا جاتا تھا۔‬
‫اس تمام اقدامات کی مثالوں کے لئے یہ روایات ملحظہ فرمائیے۔‬
‫قال شافعی‪ :‬و ل نعلم النبی صلی اللہ علیہ وسسلم سسبی بعسد حنیسن احسدا۔ و ل نعلسم ابسابکر‬
‫سبی عربیا من اھل الردۃ۔ ولکن اسرھم ابوبکر حسستی خلصسھم عمسسر۔ )بیہقسسی‪ ،‬معرف سۃ السسسنن‬
‫والثار‪ ،‬کتاب السیر‪ ،‬حدیث ‪(17966‬‬

‫امام شافعی کہتے ہیں‪" ،‬ہمارے علم میں نہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غزوہ حنیسسن‬
‫کے بعد کسی کو غلم بنایا ہو۔ نہ ہی ہمارے علم میں ہے کہ سیدنا ابسسوبکر رضسسی الل سہ عن سہ ن سے‬
‫مرتدین کے ساتھ جنگوں میں کسی عرب کو غلم بنایا ہو۔ ابوبکر نے انہیں قیسسد ضسسرور کیسسا۔‬
‫)یہ لوگ قید میں رہے( یہاں تک سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے انہیں رہا کر دیا۔‬

‫ُ‬
‫َ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ي‬
‫س ْ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫مه ِ ؛ أ ّ‬
‫ن َر ُ‬
‫فَيا ُ‬
‫َ‬
‫م يُ َ‬
‫ل ‪ :‬حد ّث ََنا ُ‬
‫ن عُ َ‬
‫سس ّ‬
‫ل ل َس ْ‬
‫خط ّسسا ِ‬
‫ب أت ِس َ‬
‫مسَر ب ْس َ‬
‫ج ٍ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33889‬‬
‫ه‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ت‬
‫ع‬
‫أ‬
‫ف‬
‫بي‬
‫س‬
‫َْ ُ ْ‬
‫بِ َ ِ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے پاس جنگی قیدی لئے گئے‪ ،‬انہوں نے ان سب کو آزاد کر دیا۔‬

‫َ‬
‫فص بن ِغياث ‪ ،‬ع َ َ‬
‫ن‬
‫ح ْ‬
‫ن َزْيسد ٍ ‪َ ،‬‬
‫ة‪َ ،‬‬
‫صس َ‬
‫م َ‬
‫ح ْ ُ ْ ُ َ ٍ‬
‫ة ْبسن أِبسي َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫َ‬
‫ن أِبسي َ‬
‫سسل َ َ‬
‫ف َ‬
‫عس ْ‬
‫ن ع َِلس ّ‬
‫عس ْ‬
‫ْ‬
‫ي ْبس ِ‬
‫‪154‬‬

‫س‬
‫س َ‬
‫ن ِ‬
‫مهَْرا َ‬
‫ُيو ُ‬
‫ن ع َب ّسسا ٍ‬
‫ن اب ْ ِ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ِ‬
‫ف بْ ِ‬
‫ْ‬
‫هُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م ْ‬
‫ن‪،‬ف ِ‬
‫سل ِ ِ‬
‫ن ِ‬
‫شر ِ ِ‬
‫م ْ‬
‫فكاك ُ‬
‫ن ال ُ‬
‫ال ْ ُ‬
‫مي َ‬
‫م َ‬
‫كي َ‬

‫کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33937‬‬

‫َ‬
‫ل ع ُمسر ‪ :‬ك ُس ّ َ‬
‫ل ‪ :‬قَسسا َ‬
‫‪ ،‬قَسسا َ‬
‫دي‬
‫ن فِسسي أي ْس ِ‬
‫لأ ِ‬
‫سسسيرٍ ك َسسا َ‬
‫َ ُ‬
‫ْ‬
‫ن‪) .‬مصسسنف ابسسن ابسسی شسسیبہ‪،‬‬
‫سل ِ ِ‬
‫ن ب َي ْ ِ‬
‫ِ‬
‫م ْ‬
‫ل ال ُ‬
‫ت َ‬
‫مي َ‬
‫ما ِ‬
‫م ْ‬

‫سیدنا ابن عباس روایت کرتے ہیں سیدنا عمر رضی اللہ عن ہم ن سے فرمایسسا‪ " ،‬ہر وہ مسسسلمان‬
‫قیدی جو مشرکین کے پاس ہے‪ ،‬اس کا فدیہ مسلمانوں کے بیت المال سے ادا کیا جائے گا۔"‬

‫ُ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن‪،‬‬
‫م ُ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن ع َب ْسد ِ الّر ْ‬
‫ن ُ‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬حد ّث ََنا أ َ‬
‫ح َ‬
‫ح َ‬
‫سا َ‬
‫ن الّزهْرِيّ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ة بْ ُ‬
‫مسس ِ‬
‫مي ْد ِ ب ْ ِ‬
‫ن َزي ْد ٍ ‪ ،‬ع َ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ً‬
‫ل ‪َ :‬قا َ‬
‫َقا َ‬
‫ن‬
‫دي الك ّ‬
‫ي ِ‬
‫ن أي ْس ِ‬
‫ن ِ‬
‫سسل ِ ِ‬
‫جل ِ‬
‫ست َن ْ ِ‬
‫حس ّ‬
‫فسسارِ أ َ‬
‫قذ َ َر ُ‬
‫مُر ‪ :‬ل ْ‬
‫م ْ‬
‫نأ ْ‬
‫ن ال ُ‬
‫ل عُ َ‬
‫مس ْ‬
‫ب إلس ّ‬
‫مس ْ‬
‫مي َ‬
‫م َ‬
‫ْ‬
‫ب‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33928‬‬
‫ِ‬
‫جزي َةِ العََر ِ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کہا کرتے تھے‪" ،‬اگر میں مسلمانوں کے ایک شخص کو بھی دشمن‬
‫کی قید سے آزاد کرواؤں تو یہ میرے لئے پورے عرب کے جزیہ سے زیادہ پسندیدہ ہے۔"‬

‫س سأ َ َ‬
‫ب ‪ ،‬قَسسا َ‬
‫ن بِ ْ‬
‫ن َ‬
‫ن‬
‫ن ع ُي َي ْن َ َ‬
‫ري ٍ‬
‫َ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫ن غ َسسال ِ ٍ‬
‫ل اب ْس ُ‬
‫ك ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ة ‪ ،‬عَ ْ‬
‫حد ّث ََنا اب ْ ُ‬
‫شس ِ‬
‫شسرِ ب ْس ِ‬
‫ن ع َب ْد ِ اللهِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫فك َسساك ُُ‬
‫َ‬
‫سسُر ؟ قَسسا َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫ه‬
‫ؤ‬
‫ي‬
‫ف‬
‫‪،‬‬
‫ة‬
‫س‬
‫م‬
‫ذ‬
‫ال‬
‫ل‬
‫س‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ت‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ر‬
‫ال‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ن‬
‫س‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ر‬
‫ي‬
‫ب‬
‫ز‬
‫ال‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ل ‪ :‬فَ ِ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫ِ ّ ِ‬
‫ّ‬
‫َ َ َ‬
‫خ ِراج ُ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن َقات َ َ‬
‫م‪) .‬مصنف ابسسن ابسسی شسسیبہ‪ ،‬کتسساب الج ہاد‪ ،‬حسسدیث‬
‫ذي‬
‫ل‬
‫ا‬
‫م‬
‫و‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ك‬
‫ئ‬
‫ل‬
‫أو‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ل ع َن ْهُ ْ‬
‫َ‬
‫م ْ‬
‫ْ ِ‬
‫ن َ َ ِ‬
‫‪(33938‬‬

‫ابن زبیر نے سیدنا حسن بن علی رضی اللہ عنہم سے ایسے شخص کے بارے میں پوچ ھا جسسو‬
‫)غیر مسلم( اھل ذمہ میں سے ہو اور قیدی بنا لیا گیسسا ہو۔ ان ہوں نسے فرمایسسا‪" ،‬اس کسسا فسسدیہ‬
‫مسلمانوں کے خراج )بیت المال( میں سے ادا کیا جائے گا کیسسونکہ وہ ان ہی کسسی طسسرف س سے‬
‫جنگ کر رہا تھا۔"‬

‫َ‬
‫ُ‬
‫ك ‪ ،‬ع َن محمد بن إسحاقَ ‪ ،‬ع َ َ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫ري ٌ‬
‫فرٍ ‪َ ،‬قا َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫ر‬
‫جع ْ َ‬
‫ي ب ِأ ِ‬
‫كا َ‬
‫ن أِبي َ‬
‫ْ ُ َ ّ ِ ْ ِ ِ ْ َ‬
‫َ‬
‫ي إ َِذا أت ِ َ‬
‫ن ع َل ِ ّ‬
‫ْ‬
‫سي ٍ‬
‫ش ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه‪) .‬مصسسسنف‬
‫ل‬
‫بي‬
‫س‬
‫لى‬
‫خ‬
‫و‬
‫‪،‬‬
‫د‬
‫عو‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ن‬
‫أ‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ذ‬
‫خ‬
‫أ‬
‫و‬
‫‪،‬‬
‫ه‬
‫ح‬
‫ل‬
‫س‬
‫ذ‬
‫خ‬
‫أ‬
‫و‬
‫‪،‬‬
‫ه‬
‫ت‬
‫ب‬
‫دا‬
‫ذ‬
‫خ‬
‫أ‬
‫‪،‬‬
‫ن‬
‫في‬
‫ّ‬
‫ص‬
‫م‬
‫و‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ ُ‬
‫َ‬
‫ُ َ‬
‫ُ َ‬
‫َ‬
‫يَ ْ‬

‫ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33944‬‬

‫ابو جعفر کہتے ہیں کہ سیدنا علی رضی اللہ عنہ کے پاس جنگ صفین کا ایسسک قیسسدی لیسسا گیسسا۔‬
‫آپ نے اس کا جانور اور اسلحہ لے لیا اور اس سے یسہ وعسدہ لسے کسر اسسے آزاد کسسر دیسسا کسہ وہ‬
‫دوبارہ آپ سے جنگ کرنے نہیں آئے گا۔‬

‫فر ‪ ،‬ع َن أ َبيه ‪َ ،‬قا َ َ‬
‫م‬
‫ح ْ‬
‫ْ ِ ِ‬
‫ن ِغَيا ٍ‬
‫ن َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫َ‬
‫ه ‪ ،‬فَن َسساَدى ي َسوْ َ‬
‫من َسساد ِي َ ُ‬
‫ي ُ‬
‫ل‪:‬أ َ‬
‫ف ُ‬
‫م سَر ع َل ِس ّ‬
‫ث ‪ ،‬عَ ْ‬
‫ص بْ ُ‬
‫جع ْ َ ٍ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫سيٌر‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33950‬‬
‫صَرةِ ‪ :‬ل ي ُ ْ‬
‫قت َل أ ِ‬
‫الب َ ْ‬
‫ابو جعفر کہتے ہیں کہ سیدنا علی رضی اللہ عنہ نے بصرہ کی جنگ میں یہ اعلن کرنے کا حکم‬
‫دیا کہ کسی قیدی کو قتل نہ کیا جائے۔‬

‫َ‬
‫فر ‪ ،‬ع َن ال ْحسن ؛ أ َن ال ْحجا ُ‬
‫ن ُ َ‬
‫ن ُ‬
‫سسسيرٍ ‪،‬‬
‫شعْب َ َ‬
‫ي ب ِأ ِ‬
‫َ ّ َ‬
‫ّ‬
‫ن َ‬
‫َ‬
‫ج أِتسس َ‬
‫ة ‪ ،‬عَ ْ‬
‫حد ّث ََنا غ ُن ْد ٌَر ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫جع ْ َ ٍ‬
‫َ َ ِ‬
‫ِ‬
‫خلي ْد ِ ب ْ ِ‬
‫ُ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫فَ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ه‪:‬‬
‫س‬
‫ل‬
‫ال‬
‫ل‬
‫سو‬
‫س‬
‫ُ‬
‫ق‬
‫ي‬
‫‪,‬‬
‫سا‬
‫س‬
‫ن‬
‫ر‬
‫م‬
‫أ‬
‫ذا‬
‫س‬
‫ه‬
‫ب‬
‫سا‬
‫س‬
‫م‬
‫‪:‬‬
‫ر‬
‫م‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ا‬
‫ل‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ف‬
‫‪،‬‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ت‬
‫ق‬
‫فا‬
‫م‬
‫ق‬
‫‪:‬‬
‫ر‬
‫م‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ه‬
‫الل‬
‫د‬
‫ب‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ل‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ َِ‬
‫ْ‬
‫َ َ‬
‫ُ‬
‫َ َ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫م فَ ُ‬
‫ء{‪) .‬مصسسنف ابسسن ابسسی شسسیبہ‪،‬‬
‫دا ً‬
‫حّتى إ َِذا أث ْ َ‬
‫ما فِ َ‬
‫ش ّ‬
‫} َ‬
‫مّنا ب َعْد ُ وَإ ِ ّ‬
‫ما َ‬
‫دوا الوََثاقَ فَإ ِ ّ‬
‫موهُ ْ‬
‫خن ْت ُ ُ‬
‫کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33946‬‬

‫حسن بصری کہتے ہیں کہ حجاج )بن یوسف( کسے پساس ایسک جنگسی قیسسدی لیسسا گیسسا۔ اس نسے‬
‫عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے ک ہا‪" ،‬اٹھیسے اور اسسے قتسسل کسسر دیجیسے۔" ابسسن عمسسر نسے‬
‫فرمایا‪" ،‬ہمیں اس کا حکم نہیں دیا گیا۔ اللہ تعالی کا حکم ہے‪' ،‬جسسب تسسم انہیسسں )جنسسگ میسسں(‬
‫قتل کر چکو تو انہیں مضبوطی سے باندھ لو۔ اس کے بعد یا تو بطور احسسسان ر ہا کسسر دو یسسا‬
‫پھر بطور فدیہ رہا کر دو۔' " )اس طرح ابن عمر رضی اللہ عن سہ ن سے وقسست ک سے ایسسک ظسسالم و‬
‫جابر گورنر کے سامنے کلمہ حق ادا کیا۔(‬

‫ي‬
‫حد ّث ََنا ع َب ْد ُ الّر ِ‬
‫حّيا َ‬
‫ن َ‬
‫مل ِ ِ‬
‫ما َ‬
‫َ‬
‫ن َ‬
‫ن ُ‬
‫ن عَ ّ‬
‫ن ع َب ْد ِ ال ْ َ‬
‫سل َي ْ َ‬
‫مارٍ الد ّهْن ِ ّ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ْ‬
‫ن ‪ ،‬عَ ْ‬
‫حيم ِ ب ْ ُ‬
‫سِعيد ِ ب ْ ِ‬
‫ك بْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ب‬
‫ل‬
‫طسسا‬
‫بي‬
‫أ‬
‫ن‬
‫ب‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫م‬
‫ه‬
‫ث‬
‫ع‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ذي‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ش‬
‫ي‬
‫ج‬
‫ل‬
‫ا‬
‫في‬
‫ت‬
‫ن‬
‫ك‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫ل‬
‫ي‬
‫َ‬
‫ف‬
‫ط‬
‫ال‬
‫بو‬
‫أ‬
‫ني‬
‫ث‬
‫د‬
‫ح‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ّ‬
‫ّ ُ ِ‬
‫ُ ْ‬
‫ُ‬
‫ٍ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قا َ‬
‫ق ‪َ ،‬قا َ‬
‫ة‬
‫ل ‪ :‬فَ َ‬
‫جي َ َ‬
‫فْرقَ ٍ‬
‫ميُرَنا ل ِ ِ‬
‫ل‪:‬أ ِ‬
‫م ع َلى ث َل ِ‬
‫م فَوَ َ‬
‫جد َْناهُ ْ‬
‫ة ‪َ ,‬فان ْت َهَي َْنا إلي ْهِ ْ‬
‫إلى ب َِني َنا ِ‬
‫ث فَِر ٍ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫مَنا ‪ ,‬فثبتنا على إسلمنا ‪ ،‬قال اعتزلوا‬
‫ِ‬
‫م ؟ قالوا ‪ :‬ن َ ْ‬
‫ن قوْ ٌ‬
‫صاَرى وَأ ْ‬
‫سل ْ‬
‫ما أن ْت ُ ْ‬
‫م‪َ :‬‬
‫من ْهُ ْ‬
‫م نَ َ‬
‫ح ُ‬
‫ل للثانية ‪ :‬ما أنتم ؟ قالوا نحن قوم من النصارى لم نر دينسسا أ َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن ِدين ِن َسسا‬
‫س‬
‫م‬
‫ل‬
‫س‬
‫ض‬
‫ف‬
‫قا‬
‫ثم‬
‫‪,‬‬
‫َ‬
‫ِ ْ‬
‫فثبتنا عليه فقال اعتزلو ‪ ,‬ثسسم قَسسا َ‬
‫ل لفرقسسة أخسسرى ‪ :‬مسسا أنتسسم ؟ قسسالوا نحسسن قسسوم مسسن‬
‫‪155‬‬

‫َ‬
‫ْ‬
‫قا َ َ‬
‫ت فَ ُ‬
‫فعَُلوا‬
‫م فَ َ‬
‫وا ‪ ،‬فَ َ‬
‫سي ث َل َ َ‬
‫مّرا ٍ‬
‫حت َرأ ِ‬
‫ش ّ‬
‫س ْ‬
‫ص َ‬
‫م َ‬
‫دوا ع َل َي ْهِ ْ‬
‫ث َ‬
‫حاب ِهِ ‪ :‬إَذا َ‬
‫لل ْ‬
‫النصارى فَأب َ ْ‬
‫صس َ‬
‫م َ‬
‫فَ َ‬
‫ن هُب َي ْسَرةَ‬
‫قل َ ُ‬
‫قات ِل َ َ‬
‫جسساَء ِ‬
‫ي وَ َ‬
‫ة وَ َ‬
‫وا الذ َّراِري ‪ ,‬فَ ِ‬
‫قت َُلوا ال ْ ُ‬
‫م ْ‬
‫ة ب ْس ُ‬
‫جْئت ِبالذ َّرارِيّ إَلى َ ع َل ِ ّ‬
‫سب َ ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قب َس َ‬
‫َفا ْ‬
‫ة‬
‫صس َ‬
‫ن يَ ْ‬
‫قل َ ُ‬
‫ل ‪ ,‬فَسسان ْط َل َقَ ِ‬
‫جاَء ب ِ ِ‬
‫م بِ ِ‬
‫ف إَلى ع َِلي ‪ ,‬فَ سأَبى أ ْ‬
‫مئ َةِ أل ْ ٍ‬
‫ف فَ َ‬
‫ي أل ْ ٍ‬
‫شت ََراهُ ْ‬
‫م ْ‬
‫مائ َت َ ْ‬
‫َ‬
‫م‪) .‬مصسسنف ابسسن ابسسی شسسیبہ‪ ،‬کتسساب الج ہاد‪ ،‬حسسدیث‬
‫ة فَسأع ْت َ َ‬
‫صس َ‬
‫قل َ ُ‬
‫م ِ‬
‫ب ِد ََراه ِ ِ‬
‫قهُ ْ‬
‫مد َ إل َي ْهِ ْ‬
‫مهِ وَع َ َ‬
‫م ْ‬
‫‪(33408‬‬

‫ابو طفیل کہتے ہیں کہ میں ایک لشکر میں تھا جسے سیدنا علی رضی اللہ عنسہ نسے بنسسو نساجیہ‬
‫کی طرف بھیجا تھا۔ جب ہم ان تک پہنچے تو ہمیں ان کے تین گروہ ملے۔ ہمارے امیر نے ایسسک‬
‫گروہ سے پوچھا‪" ،‬تم کون ہو؟" وہ کہنے لگے‪" ،‬ہم عیسائی قسسوم ہیسسں لیکسسن ہم اسسسلم قبسسول‬
‫کرتے ہیں۔ ہمیں اپنے اسلم پر ثابت قدم رہنے دیجیے۔" امیر نے کہا‪ ،‬انہیں چھوڑ دو۔‬
‫اس کے بعد ہمارا سامنا دوسرے گروہ سے ہوا تسو ان سسے پوچ ھا‪" ،‬تسم کسون ہو؟" وہ کہنسے‬
‫لگے‪" ،‬ہم عیسائی قوم ہیں۔ ہمیں اپنے دیسسن سسے اچ ھا کسسوئی دیسسن نہیسسں لگتسسا۔ ) ہم آپ کسسی‬
‫اطاعت قبول کرتے ہیں بس( ہمیں اسی پر قائم رہنے دیجیے۔" امیر نے کہا‪" ،‬انہیں بھی چھوڑ‬
‫دو۔"‬
‫اس کے بعد ہمارا سامنا تیسرے گروہ سے ہوا۔ ان سے بھی پوچھا گیا کہ وہ کون ہیں۔ ان ہوں‬
‫نے کہا‪" ،‬ہم عیسائی قوم ہیں۔" اس کے بعد انہوں نے سرکشی دکھائی )یعنی جنگ پر تیار ہو‬
‫گئے۔( امیر لشکر کہنے لگے‪" ،‬جب میں اپنے سر پر تین مرتبہ ہاتھ پھیروں تو ان پسسر حملسہ کسسر‬
‫دینا۔" ہم نے ان سے جنگ کی اور ان کے فوجیوں کسسو ہلک کسسر کسے ان کسے بیسسوی بچسسوں کسسو‬
‫قیدی بنا لیا۔ ہم ان قیدیوں کو لے کر سیدنا علی رضی اللہ عنہ کے پاس آ رہے تھے کہ مصسسقلہ‬
‫بن ھبیرہ آیا اور اس نے ان قیدیوں کی خدمات کو دو لکھ درہم )ایڈوانس دے کر( خرید لیسسا۔‬
‫اس کے بعد وہ ایک لکھ درہم لے کر سیدنا علی کے پاس آیا۔ آپ نسے اسسے قبسسول کرنسے سسے‬
‫انکار کر دیا۔ آپ نے مصقلہ کو اس کی رقم واپس کی اور تمام قیدیوں کو آزاد کر دیا۔‬
‫حدثنا حمید ثنا ابو جعفر النفیلی انا ابن عینیہ عن عبداللہ ابن شریک عن بشر بن غسال مسسسع‬
‫ابن الزبیر یسال الحسین بن علی عن السیر من اھل الذمہ یاسرہ العدو۔ قسسال‪ :‬فکسساکہ علسسی‬
‫المسلمین۔ )حمید بن زنجویہ‪ ،‬کتاب الموال(‬
‫سیدنا عبداللہ بن زبیر نے سیدنا حسین بن علی رضی اللہ عنہم سے ذمی غیسسر مسسسلم قیسسدی‬
‫کے بارے میں سوال کیا جسے دشمن نے قید کر رکھا تھا۔ آپ نے فرمایسسا‪" ،‬اس سے آزاد کروانسسا‬
‫مسلمانوں کی ذمہ داری ہے۔"‬
‫ثنا الحکم بن نافع انا صفوان بن عمرو ان عمر بن عبدالعزیز قال‪ :‬اذا خرج السیر المسسسلم‬
‫یفادی نفسہ‪ ،‬فقد وجب فداؤہ علی المسسلمین۔ لیسس ل ھم ردہ السی المشسسرکین۔ )حمیسد بسسن‬
‫زنجویہ‪ ،‬کتاب الموال(‬
‫سیدنا عمر بن عبدالعزیز رحمہ اللہ نے فرمایا‪" ،‬اگر کوئی مسلمان جنگی قیدی اپنا فدیہ خود‬
‫ادا کر کے نکل آئے تو اس فدیے کو اسے ادا کرنا مسلمانوں )کی حکومت( کی ذمہ داری ہو‬
‫گی۔ اسے کسی صورت میں بھی مشرک دشمنوں کے حوالے نہ کیا جائے گا۔‬

‫َ‬
‫فيان ‪ ،‬ع َ َ‬
‫م سَر‬
‫صم ِ ب ْس‬
‫جوَي ْرِي َةِ ‪ ،‬وَ َ‬
‫جْر ِ‬
‫عا ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ي؛أ ّ‬
‫ب ال ْ َ‬
‫ن أِبي ال ْ ُ‬
‫س ْ َ َ‬
‫َ‬
‫ن ُ‬
‫ن عُ َ‬
‫ن ك ُل َي ْس ٍ‬
‫مس ّ‬
‫ْ‬
‫كيعٌ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ً‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ف‪) .‬مصنف‬
‫ل‬
‫أ‬
‫ة‬
‫ئ‬
‫م‬
‫ب‬
‫ب‬
‫ر‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ل‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ن‬
‫م‬
‫م‬
‫ر‬
‫ج‬
‫ن‬
‫م‬
‫ن‬
‫مي‬
‫ل‬
‫س‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ن‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ر‬
‫دى‬
‫ف‬
‫ز‬
‫زي‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ا‬
‫د‬
‫ب‬
‫ع‬
‫ن‬
‫َ‬
‫َ ْ ِ ِ ِ ِ‬
‫ٍ‬
‫بْ َ ْ ِ َ ِ ِ َ َ ُ‬
‫ُ ْ ِ ِ َ ِ ْ َ ْ ٍ ِ ْ ْ ِ‬
‫ِ َ‬

‫ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33923‬‬

‫عمر بن عبدالعزیز رحمۃ اللہ علیہ نے مسلمانوں کے ایک فوجی کا ایک لکھ جرمانہ ادا کر کے‬
‫اسے آزاد کروایا۔‬

‫جلیل القدر تابعین کا بھی یہی موقف تھا کہ جنگی قیدیوں کو بلمعاوضہ یسسا فسسدیہ ل سے‬
‫کر رہا کرنا ہی قرآن کا بنیادی حکم ہے۔‬
‫سسن ‪ ،‬وَع َ َ‬
‫ن أَ ْ‬
‫ن‬
‫ح ْ‬
‫ث‪َ ،‬‬
‫شسعَ َ‬
‫سسيرِ ِ‬
‫طساٍء ‪َ ،‬قسال َ ِفسي ال َ ِ‬
‫ن ِغَيا ٍ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫حد ّث ََنا َ‬
‫َ‬
‫ف ُ‬
‫مس َ‬
‫ث ‪ ،‬عَ ْ‬
‫ص بْ ُ‬
‫ح َ ِ‬
‫عس ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫دى‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33922‬‬
‫ن ع َلي ْهِ ‪ ،‬أوْ ي ُ َ‬
‫م‬
‫ي‬
‫‪:‬‬
‫ن‬
‫كي‬
‫ر‬
‫ش‬
‫م‬
‫ل‬
‫ِ‬
‫فا َ‬
‫ُ‬
‫َ ّ‬
‫ا ُ ِ َ‬
‫حسن بصری اور عطا خراسانی )تابعین کے دو بڑے اور مشہور علماء( مشرکین کے قیدیوں‬
‫کے متعلق کہا کرتے تھے‪" ،‬یا تو انہیں بطور احسان رہا کیا جائے یسا پ ھر ان سسے فسسدیہ لسے لیسا‬
‫جائے۔"‬
‫‪156‬‬

‫ن ال ّ‬
‫ن ع َل َي ْسهِ ‪ ،‬أ َْو‬
‫س ْ‬
‫ي ؛ فِسسي ال َ ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫ن َ‬
‫فَيا َ‬
‫َ‬
‫ن ُ‬
‫سسسيرِ ‪ :‬ي ُ َ‬
‫مس ّ‬
‫شسعْب ِ ّ‬
‫ن ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫كيعٌ ‪ ،‬ع َ ْ‬
‫جسساب ِرٍ ‪ ،‬ع َس ِ‬
‫ه‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33925‬‬
‫يُ َ‬
‫فاَدى ب ِ ِ‬
‫شعبی )تابعین کے ایک جلیل القدر عالم( قیدیوں کے متعلق کہا کرتے تھے‪" ،‬یا تو انہیں بطور‬
‫احسان رہا کیا جائے یا پھر ان سے فدیہ لے لیا جائے۔"‬

‫َ‬
‫جَري ْسٍج ‪ ،‬قَسسا َ‬
‫ن‬
‫سسساٌء َ‬
‫ن ُ‬
‫م َ‬
‫َ‬
‫ت ل ِعَط َسساٍء ‪ :‬ن ِ َ‬
‫ل ‪ :‬قُل ْس ُ‬
‫ح ّ‬
‫حد ّث ََنا ُ‬
‫حسَرائ ُِر أ َ‬
‫صسساب َهُ ّ‬
‫مد ُ ب ْ ُ‬
‫ن اب ْس ِ‬
‫ن ب َك ْرٍ ‪ ،‬ع َس َ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ٌ‬
‫ن‬
‫ه‬
‫سسس‬
‫ُ‬
‫ف‬
‫ن‬
‫أ‬
‫ن‬
‫ه‬
‫طي‬
‫ع‬
‫ي‬
‫ن‬
‫ك‬
‫ل‬
‫و‬
‫‪،‬‬
‫ن‬
‫ه‬
‫ق‬
‫ر‬
‫ت‬
‫س‬
‫ي‬
‫ل‬
‫و‬
‫‪,‬‬
‫ل‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫؟‬
‫ن‬
‫ه‬
‫ب‬
‫صي‬
‫ي‬
‫أ‬
‫‪,‬‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ر‬
‫ن‬
‫ه‬
‫ع‬
‫تا‬
‫ب‬
‫فا‬
‫‪،‬‬
‫و‬
‫د‬
‫ع‬
‫ل‬
‫َ‬
‫َْ ُ ّ َ ُ‬
‫َ ِ ْ ُْ ِ ِ ّ ْ َ ُ ّ‬
‫َ َ ْ َ ِ ُ ّ‬
‫ُ ِ ُُ ّ‬
‫ا َ ُ ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‪) .‬مصنف ابن ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(34203‬‬
‫ذي أ َ‬
‫ب ِا َل ّ ِ‬
‫ن ب ِهِ ‪ ،‬وَل َ ي َزِد ْ ع َلي ْهِ ّ‬
‫خذ َهُ ّ‬
‫ابن جریج کہتے ہیں کہ میں نے عطا سے پوچھا‪" ،‬آزاد خواتین اگر دشمن کے قبضے میں چلی‬
‫جائیں اور دشمن سے انہیں مسلمانوں کا کوئی شخص خرید لے تو کیسسا وہ اس کسسی لون سڈیاں‬
‫بن جائیں گی؟" انہوں نے کہا ِ "ہرگز نہیں‪ ،‬وہ بالکل لونڈی نہیں بنائی جائیں گی۔ ہاں جو رقسسم‬
‫اس شخص نے ادا کی ہے‪ ،‬وہ ان خواتین )یا ان کے وارثوں یا بیت المال( سسے لسے لسسی جسسائے‬
‫گی اور اس رقم میں کوئی منافع شامل نہیں کیا جائے گا۔"‬

‫َ‬
‫حدث َنا غ ُندر ‪ ،‬ع َن أ َبي معاذ ‪ ،‬ع َ َ‬
‫قو ُ‬
‫معَ ال ّ‬
‫ن‬
‫ي ‪ ،‬يَ ُ‬
‫ح‬
‫ن ِ‬
‫س ِ‬
‫ُ َ ٍ‬
‫مسسا ك َسسا َ‬
‫ن أِبي َ‬
‫ه َ‬
‫ل‪َ :‬‬
‫ريزٍ ؛ أن ّ ُ‬
‫ْ ِ‬
‫مس ْ‬
‫شعْب ِ ّ‬
‫ْ‬
‫َ ّ َ ْ ٌَ‬
‫ِ‬
‫أ ُسارى في أ َيدي التجار ‪ ،‬فَإن ال ْحر ل َ يباع ُ ‪َ ،‬فاردد إَلى التاجر رأ ْ‬
‫ماِله‪) .‬مصنف ابسسن‬
‫س‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫َ َ‬
‫ِ ِ َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫َ َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬

‫ابی شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33211‬‬

‫شعبی کہا کرتے تھے‪" ،‬تاجروں کے ہاتھ میں جو قیدی ہیں‪ ،‬ان میں سے کسی آزاد کو نہ بیچسسا‬
‫جائے۔ تاجر کو اس کی اصل رقم واپس کر دی جائے۔"‬

‫َ‬
‫كيعٌ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ل ال ْعَهْسد ِ إ َِذا‬
‫سس ْ‬
‫ن إب َْرا ِ‬
‫حد ّث ََنا وَ ِ‬
‫فَيا ُ‬
‫َ‬
‫ل ‪ :‬حد ّث ََنا ُ‬
‫هي س َ‬
‫ن ُ‬
‫م ؛ فِسسي أهْ س ِ‬
‫مِغي سَرةَ ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ن ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ن‪) .‬مصنف ابن ابسسی‬
‫قو‬
‫ر‬
‫ت‬
‫س‬
‫ي‬
‫ل‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫ن‬
‫مو‬
‫ل‬
‫س‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫م‬
‫ه‬
‫ي‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ر‬
‫ه‬
‫ظ‬
‫م‬
‫ث‬
‫‪،‬‬
‫ن‬
‫كو‬
‫ر‬
‫ش‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫م‬
‫ه‬
‫با‬
‫س‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ ْ ُ َ‬
‫َ‬
‫ِْ َ‬
‫ّ‬
‫َ َ َ‬
‫ُ ْ َ‬
‫َ َ‬
‫ُ ِ‬
‫شیبہ‪ ،‬کتاب الجہاد‪ ،‬حدیث ‪(33939‬‬

‫)جلیل القدر تابعی عالم( ابراہیم نخعی )غیر مسلم( اہل عہد کے بارے میں کہتے ہیسسں کسہ اگسسر‬
‫دشمن مشرک انہیں غلم بنا لیں اور اس کے بعد وہ مسلمانوں کے قبضسے میسسں آ جسسائیں تسسو‬
‫انہیں غلم نہ بنایا جائے۔‬

‫اب یہ سوال باقی رہ جاتا ہے کہ ان جنگی قیدیوں کو غلم بنایا ہی کیوں گیا؟ اس کسسا‬
‫جواب سید قطب نے یہ دیا ہے کہ ایسا اسلم کے قانون کے تحسست نہیسسں بلک سہ اس دور‬
‫کے بین القوامی قانون کے تحت کیا گیا۔ موجودہ دور میں جب بین القوامی قسسانون‬
‫تبدیل ہو چکا ہے‪ ،‬تو جنگی قیدیوں کو غلم بنانے کی اجازت اسلم میں موجود نہیسسں‬
‫ہے۔‬
‫وقد سبق لنا في مواضع مختلفة من هذه الظلل القسسول بسسأنه كسسان لمواجهسسة أوضسساع‬
‫عالمية قائمة ‪ ,‬وتقاليد في الحرب عامسسة ‪ .‬ولسسم يكسسن ممكنسسا أن يطبسسق السسسلم فسسي‬
‫جميع الحالت النص العام‪) :‬فإما منا بعد وإما فداء(‪ . .‬في الوقت الذي يسترق أعداء‬
‫السلم من يأسرونهم من المسسلمين ‪ .‬ومسسن ثسم طبقسسه الرسسول ] ص [ فسي بعسسض‬
‫الحالت فسسأطلق بعسسض السسسارى منسسا ‪ .‬وفسسادى ببعضسسهم أسسسرى المسسسلمين ‪ ,‬وفسسادى‬
‫بعضهم بالمال ‪ .‬وفي حالت أخرى وقع السسسترقاق لمواجهسسة حسسالت قائمسسة ل تعالسسج‬
‫بغير هسسذا الجسسراء ‪ .‬فسسإذا حسسدث أن اتفقسست المعسسسكرات كلهسسا علسسى عسسدم اسسسترقاق‬
‫السرى ‪ ,‬فإن السلم يرجع حينئذ إلى قاعدته اليجابية الوحيدة وهي‪) :‬فإما منسسا بعسسد‬
‫وإما فداء( لنقضاء الوضاع التي كانت تقضي بالسترقاق ‪ .‬فليس السترقاق حتميا ‪,‬‬
‫وليس قاعدة من قواعد معاملة السسسرى فسسي السسسلم ‪) .‬سسسيد قطسسب‪ ،‬تفسسسير فسسی‬
‫ظلل القرآن؛ سورة محمد ‪(47:4‬‬
‫ہماری اس تفسیر "ظلل" میں مختلف مقامات پر یہ بحث گزر چکسسی ہہہے کسہ )عہ ہد رسسسالت‬
‫اور خلفاء راشدین کے دور میں( غلم بنائے جانے کا معاملہ بین القسسوامی جنگسسی قسسانون ک سے‬
‫تحت تھا۔ ہر قسم کے حالت میں اس عام صریح حکم کہ "قیدیوں کو احسان رکھ کر چھوڑ‬
‫دو یا فدیہ لے کر آزاد کر دو" پر عمل کرنا ناممکن تھا۔ )خاص طور پسسر( اس دور میسسں جسسب‬
‫اسلم کے دشمن مسلمان قیدیوں کو غلم بنا کر رکھا کرتے تھے۔‬
‫‪157‬‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میں اس پسسر عمسسل کرنسے کسسی کوشسسش کسسی‬
‫گئی۔ بعض حالت میں بعض قیدیوں کو احسان رکھ کسسر چ ھوڑ دیسسا گیسسا۔ بعسسض قیسسدیوں کسسو‬
‫مسلمان قیدیوں کے بدلے رہا کر دیا گیا اور بعض قیدیوں سے فسدیہ لسے کسر انہیسں چ ھوڑ دیسا‬
‫گیا۔ بعض ایسے حالت میں غلم بھی بنائے گئے جس کے بغیر چارہ ہی ن سہ ت ھا۔ اس ک سے بعسسد‬
‫دنیا بھر کی افواج )اور حکومتیں( اس بات پر متفق ہو گئی ہیں کہ جنگی قیدیوں کو غلم نہ‬
‫بنایا جائے گا تو مسلمان بھی اپنے اصل قانون کی طرف لسسوٹ جسسائیں گ سے ک سہ "قیسسدیوں کسسو‬
‫احسان رکھ کر چھوڑ دو یا فدیہ لے کر آزاد کر دو"۔ اس کی وجہ یہ ہے ک سہ اب وہ حسسالت ہی‬
‫ختم ہو چکے ہیں جن میں غلم بنائے جاتے تھے۔ اب غلم بنائے جانے کو مکمل طسور پسسر ختسسم‬
‫کر دیا گیا ہے اور غلم بنا لیا جانا اسلم کا قانون نہیں ہے۔‬

‫انسداد غلمی کی تحریک میں خلفاء‬
‫راشدین کا کردار اور اس ک ے اثرات‬
‫انسداد غلمی کی اس تحریک میں خلفاء راشدین کے کردار کا ایک پہلو تو ہم بیسسان‬
‫کر چکے ہیں کہ یہ حضرات غلموں کو دیے جانے والے تمسسام حقسسوق کسے ضسسامن ت ھے۔‬
‫اگر کوئی آقا کسی غلم کو اس کا حق دینے میں ٹال مٹول کرتا تسسو غلمسسوں کسسو یسہ‬
‫سہولت حاصل تھی کہ وہ کسی بھی وقت آ کر خلیفہ سے شکایت کر سسسکیں اور ان‬
‫کی شکایات پر خلیفہ فورا ً حرکت میں آ جایا کرتے تھے۔ اس کی نسسوبت کسسم ہی آیسسا‬
‫کرتی تھی کیونکہ آبادی کا بڑا حصہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم اور آپ کسسے‬
‫قریبی صحابہ کا تربیت یافتہ تھا اور وہ خود ہی غلموں کسسو ان کسسی آزادی سسسمیت وہ‬
‫تمام حقوق دینے کو تیار تھے جس کی تفصیل ہم پچھلے ابواب میسسں بیسسان کسسر چک سے‬
‫ہیں۔‬

‫عرب میں غلمی کا مکمل خاتم ہ‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے زمانے میں غلمسسی کسے خسساتمے کسے لئے ایسسک ب ہت بسسڑی‬
‫پیش رفت کی گئی۔ آپ کے دور میں ایران‪ ،‬شام اور مصر کی طرف پیسسش قسسدمی‬
‫جاری تھی جس کی وجہ سے خلفت اسلمیہ کی سرحدیں مسلسل پھیل رہی تھیسسں‬
‫جبکہ عرب معاشرہ اب پوری طرح مسسستحکم ہو چکسسا ت ھا۔ عربسسوں میسسں اس وقسست‬
‫کسی قسم کی بغاوت موجود نہ تھی۔‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے عرب کی حدود میں غلمی کسا مکمسل خساتمہ کرنسے‬
‫کے لئے یہ حکم جاری فرمایا کہ عرب کے تمام غلموں کو آزاد کر دیا جائے۔‬
‫َ‬
‫ة رسسسول الل ّسه صسّلى الل ّسه ع َل َيسه وسسل ّ َ‬
‫ب ِذ َل ِ َ‬
‫ن‬
‫دا ِ‬
‫حس ً‬
‫سست َرِقّ أ َ‬
‫م َ‬
‫م يَ ْ‬
‫سسن ّ ُ َ ُ‬
‫ت ُ‬
‫ه ل َس ْ‬
‫م أن ّس ُ‬
‫ْ ِ َ َ َ‬
‫ُ‬
‫ضس ْ‬
‫ك َ‬
‫ِ َ‬
‫مس ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ذُ ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‬
‫يأ ْ‬
‫ماِء ِ‬
‫هل ال َ‬
‫ضا َ‬
‫م أي ْ ً‬
‫م ‪ .‬وَكذ َل ِك َ‬
‫حّتى َرد ّ َ‬
‫من ْهُ ْ‬
‫جاه ِل ِي ّةِ وَأوْلد َ ال ِ َ‬
‫مُر ِفيهِ ْ‬
‫م عُ َ‬
‫حك َ‬
‫كورِه ِ ْ‬
‫سب ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫حَراًرا إ َِلى ع َ َ‬
‫م ‪ .‬قَسسال ‪:‬‬
‫م فِسسي أي ْس ِ‬
‫م ع ََلى فِد ْي َةٍ ي ُؤ َّدون ََها إ َِلى ال ّ ِ‬
‫أ ْ‬
‫نأ ْ‬
‫ديهِ ْ‬
‫موا وَهُ ْ‬
‫سل َ ُ‬
‫شائ ِرِه ِ ْ‬
‫ذي َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ه ال ّ‬
‫م ْ‬
‫وَهَ َ‬
‫ي‬
‫شُهوٌر ِ‬
‫يأ ّ‬
‫ن عُ َ‬
‫مَر ‪ .‬وََرَوى ع َن ْ ُ‬
‫ي عُ َ‬
‫ذا َ‬
‫م سَر قَسسال ‪ :‬ل َي ْس َ‬
‫س ع َل َسسى ع ََرب ِس ّ‬
‫ش سعْب ِ ّ‬
‫م ْ‬
‫ن ََرأ ِ‬
‫ن َ‬
‫مل ْ ٌ‬
‫م‪.‬‬
‫ن ِفي الّرقّ ِ‬
‫ضى ب ِ ِ‬
‫ك ‪ .‬وَن ُ ِ‬
‫ِ‬
‫كا َ‬
‫ف َ‬
‫ه قَ َ‬
‫من ْهُ ْ‬
‫داِء َ‬
‫ه أن ّ ُ‬
‫قل ع َن ْ ُ‬
‫م ْ‬
‫)ابو عبید‪ ،‬کتاب الموال بحوالہ موسوعۃ الفقھیۃ الکويتیۃ(‬
‫یہ سنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے سے ہی جسساری ہو گئی ت ھی ک سہ ا ہل‬
‫عرب کے مردوں کو غلم نہ بنایا جائے۔ اسی بات کا حکم سیدنا عمر رضی اللہ عنہ ن سے ب ھی‬
‫اس وقت جاری فرمایا جب انہوں نے مسلمانوں کے ہاں قید‪ ،‬اہل جاہلیت کے جنگی قیسسدیوں‬
‫اور لونڈیوں کی اولدوں کو اہل اسلم کو فدیہ ادا کرنے کے بدلے آزاد کر کے اپنے قبائل میسسں‬
‫جانے کی اجازت دے دی۔ یہ سیدنا عمر رضی اللہ عن سہ کسسی مش سہور رائے ہے۔ شسسعبی روایسست‬
‫کرتے ہیں کہ سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا‪" ،‬عرب کو غلم نہ بنایسسا جسسائے گسسا۔" ان س سے‬
‫نقل کیا گیا ہے کہ کہ انہوں نے عرب میں موجود غلمسسوں کسسو فسسدیہ ادا کسسر کسے آزاد کرن سے کسسا‬
‫‪158‬‬

‫فیصلہ دیا۔‬

‫آپ عربوں کو شرم دلیا کرتے تھے کہ وہ اپنے بھائیوں ہی کو غلم بنائے ہوئے ہیں‪:‬‬
‫َ‬
‫َ‬
‫مل ِ َ‬
‫وَل ِذ َل ِ َ‬
‫م سه ِ ‪.‬‬
‫ه‪ِ :‬‬
‫مُر َر ِ‬
‫ك الّر ُ‬
‫ن ال َْعارِ أ ْ‬
‫ت عَ ّ‬
‫م سهِ أوْ ب ِن ْس َ‬
‫ن عَ ّ‬
‫ن يَ ْ‬
‫ه ع َن ْ ُ‬
‫ي الل ّ ُ‬
‫ك َقال ع ُ َ‬
‫جل اب ْ َ‬
‫م َ‬
‫ض َ‬

‫)ابن حجر‪ ،‬فتح الباری بحوالہ موسوعۃ الفقھیۃ الکويتیۃ(‬

‫عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا‪" ،‬یہ شرم کی بات ہے کہ کوئی شخص اپنے چچا کے بیٹے یا بیٹی‬
‫کا مالک ہو۔‬

‫اپنی شہادت کے وقت آپ نے یہ حکم جاری کیسسا کسہ عسسرب معاشسسرے میسسں جتنسے غلم‬
‫موجود ہیں ان سب کو اس طرح سے آزاد کر دیا جائے کہ ان کی قیمت کی ادائیگی‬
‫حکومت کے ذمہ ہو گی۔ اس کے بعد آئندہ عرب میں کوئی نیا غلم نہ بنایا جائے۔‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا عفان حدثنا حماد بن سلمة عن زيد بن أبي رافسسع أن‬
‫عمر بن الخطاب رضي الله عنه كان مستندا إلى ابن عباس وعنده ابن عمر وسسسعيد‬
‫بن زيد رضي الله عنهما فقال‪ :‬اعلموا أني لم أقل في الكللسسة شسسيئا‪ ،‬ولسسم أسسستخلف‬
‫من بعدي أحد‪ ،‬وأنه من ادرك وفاتي من سبي العرب فهو حر من مال الله عز وجل‬
‫فقال سعيد بن زيد‪ :‬أما انك لو أشرت برجل من المسلمين لتمنك الناس وقسسد فعسسل‬
‫ذلك أبو بكر رضي الله عنه واتمنه الناس۔ فقال عمر رضي اللسسه عنسسه قسسد رأيسست مسسن‬
‫أصحابي حرصا سيئا۔ واني جاعل هذا المر إلى هؤلء النفر الستة الذين مات رسسسول‬
‫الله صلى الله عليه وسلم وهو عنهم راض ثم قال عمر رضي الله عنسسه‪ :‬لسسو أدركنسسي‬
‫أحد رجلين ثم جعلت هذا المر اليه لوثقت به سالم مولى أبي حذيفة وأبو عبيدة بسسن‬
‫الجراح‪) .‬مسند احمد‪ ،‬باب عمر بن خطاب(‬
‫زید بن ابو رافع کہتے ہیں کہ )اپنی شہادت کے وقت( سیدنا عمر‪ ،‬ابن عباس کو وصیت لکھوا‬
‫رہے تھے اور ان کے پاس ابن عمر اور سعید بن زید )عمسسر کسے بیٹسے اور بہنسسوئی( رضسسی اللسہ‬
‫عنہم بھی موجود تھے۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬یہ بات اچھی طرح جان لو کہ کللہ کے بارے میں میسسں‬
‫کوئی حتمی فیصلہ نہیں کر سکا اور نہ ہی میں اپنے بعد کسی کو خلیفہ بنا کسسر جسسا ر ہا ہوں۔‬
‫عرب میں موجود جنگی قیدیوں میں جو شخص بھی )بطور غلم( میسسری وفسسات ک سے وقسست‬
‫موجود ہو‪ ،‬اسے اللہ کے مال کے ذریعے آزاد کر دیا جائے۔‬
‫سعید بن زید کہنے لگے‪" ،‬کیا ہی اچھا ہو کہ آپ مسلمانوں میں سے کسی کو جانشین مقسسرر‬
‫فرما دیں جیسا کہ ابوبکر رضی اللہ عنہ نے آپ کو جانشین بنایسسا ت ھا۔" عمسسر نسے جسسواب دیسسا‪،‬‬
‫"میں نے اس معاملے میں اپنے ساتھیوں میں خواہش دیکھی ہے۔ میں اس معاملے کو ان چھ‬
‫افراد )علی‪ ،‬عثمان‪ ،‬طلحہ‪ ،‬زبیر‪ ،‬سعد اور عبدالرح ٰمن رضی اللہ عنہم( کے سسسپرد کرن سے وال‬
‫ہوں جن سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اپنی وفات کے وقت خوش تھے۔" اس کسسے‬
‫بعد فرمانے لگے‪" ،‬اگر ابوحذیفہ کے آزاد کردہ غلم سالم یسسا ابوعبیسسدہ بسسن الجسسراح رضسسی اللسہ‬
‫عنہم میں سے کوئی ایک بھی زندہ ہوتا تو میں اسے خلیفہ مقرر کر دیتا۔"‬
‫قال الشافعی اخبرنا سفیان عن یحیی بن یحیی الغسانی‪ ،‬عن عمسسر بسسن عبسسدالعزیز‪ ،‬قسسال و‬
‫اخبرنا سفیان عن رجل‪ ،‬عن شعبی ان عمر قال‪ :‬ل یسترق العربی۔ )بیہقسسی‪ ،‬معرفسسۃ السسسنن‬
‫والثار‪ ،‬کتاب السیر‪ ،‬حدیث ‪(17958‬‬

‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا‪" ،‬اہل عرب کو غلم نہ بنایا جائے۔"‬
‫رواہ الشافعی فی الم‪ ،‬و البیہقی فی سننہ الکبری‪ ،‬و جاء فی الموال‪ ،‬ان الفاروق فدی کل‬
‫رجل من اسری العرب باربع مئۃ درہم۔ و جاء فی المسسوال و فسسی سسسنن السسبیہقی الکسسبری ان‬
‫الفاروق عمر قال‪ :‬لیس علی عربی ملک‪ ،‬و لسنا نازعی مسسن یسسد رجسسل اسسسلم علی سہ‪ ،‬و لکنسسا‬
‫نقومھم الدیۃ خمسا من البل للذی سباہ۔ وھذا بالنسبۃ لسری العرب الذین وقعوا فی السر‬
‫فی ظل جاھلیۃ۔ ثم ادرکھم السلم فاسلم مالکوھم۔ فکان علسسی کسسل اسسسیر مسسن ھذا النسسوع‬
‫ضرب علیہ الرق ان یدفع ھو‪ ،‬او یدفع ذروہ فدا‪ ،‬لمن یملکہ حرا الی عشیرتہ۔ )حاشسسیہ معرف سۃ‬
‫السنن والثار‪ ،‬کتاب السیر‪ ،‬حدیث ‪(17958‬‬

‫امام شافعی کتاب الم میں‪ ،‬بیہقی سنن الکبری میں اور )ابوعبید( کتاب الموال میں بیسسان‬
‫کرتے ہیں‪ ،‬سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے عرب کے قیدیوں میں سے ہر ایسسک کسسا فسسدیہ‬
‫‪159‬‬

‫‪ 400‬درہم ادا کیا۔ کتاب الموال اور سنن الکبری میں بیان کیا گیا ہے کہ سیدنا عمر فسساروق‬
‫نے فرمایا‪ " ،‬عرب میں غلمی نہیں رہے گی اور ہم ہر اسلم قبول کرنے والے کو اس کے آقا‬
‫کی غلمی سے نکال لیں گے۔ ہم ہر غلم کا فدیہ پانچ اونٹ مقرر کریں گے۔ یہ عسسرب ک سے ان‬
‫غلموں کا معاملہ ہے جو کہ دور جاہلیت میسسں غلم بسسن گئے ت ھے‪ ،‬اس کسے بعسسد وہ اور ان کسے‬
‫مالک مسلمان ہو گئے تھے۔ اس قسم کے ہر قیدی پر "غلم" کا اطلق ہوتا ہے اور اسسے اور‬
‫اس کی اولد کو فدیہ ادا کر کے آزاد کروایا جائے گا۔ اس کے بعد وہ آزاد ہو کر اپنسسے خانسسدان‬
‫کی طرف جا سکیں گے۔‬

‫َ‬
‫َ‬
‫ن ال ْ َ‬
‫ى أَ ْ‬
‫فَأ َ ْ‬
‫ن ع َْبسدِ‬
‫سل َ ِ‬
‫كسارِزِىّ َ‬
‫خب ََرن َسسا أب ُسسو ال ْ َ‬
‫خب ََرَنا أُبو ع َب ْد ِ الّر ْ‬
‫ح َ‬
‫من ال ّ‬
‫ح َ‬
‫ى ب ْس ُ‬
‫حسد ّث ََنا ع َل ِس ّ‬
‫س َس ِ‬
‫م ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ى َقا َ‬
‫ن ال ّ‬
‫مسسا‬
‫ح ِ‬
‫ن أِبى َ‬
‫حد ّث ََنا أُبو ع ُب َي ْد ٍ َ‬
‫زيزِ َ‬
‫ل ‪ :‬لَ ّ‬
‫ش عَ ْ‬
‫حد ّث ََنا أُبو ب َك ْرِ ب ْ ُ‬
‫ال ْعَ ِ‬
‫شعْب ِ ّ‬
‫ن عَ ِ‬
‫صي ٍ‬
‫ن ع َّيا ٍ‬
‫ل ‪ :‬ل َي ْ َ َ‬
‫خ ّ‬
‫مل ْ ٌ‬
‫ه َقا َ‬
‫ن‬
‫ن ال ْ َ‬
‫سَنا ب َِنازِ ِ‬
‫عى ِ‬
‫ى ِ‬
‫ب َر ِ‬
‫َقا َ‬
‫ك وَل َ ْ‬
‫ه ع َن ْ ُ‬
‫ى الل ّ ُ‬
‫م عُ َ‬
‫طا ِ‬
‫مسس ْ‬
‫مُر ب ْ ُ‬
‫س ع َلى ع ََرب ِ ّ‬
‫ض َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫قو ُ‬
‫ل‪َ .‬قا َ‬
‫ل هَ َ‬
‫ل َ‬
‫ذا‬
‫ل أُبو ع ُب َي ْد ٍ ي َ ُ‬
‫م ع َل َي ْهِ وَل َك ِّنا ن ُ َ‬
‫ة َ‬
‫مل ّ َ‬
‫سا ِ‬
‫م ال ْ ِ‬
‫ي َد ِ َر ُ‬
‫م ً‬
‫شي ًْئا أ ْ‬
‫خ ْ‬
‫مه ُ ُ‬
‫قوّ ُ‬
‫سل َ َ‬
‫ن ال ِب ِ ِ‬
‫م َ‬
‫ج ٍ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ملوك ًسسا‬
‫ن ي َد ِهِ ب ِل َ ِ‬
‫ه ِ‬
‫ال ّ ِ‬
‫هأ ْ‬
‫ذى ِفى ي َد ِهِ ال ّ‬
‫م ْ‬
‫ه َ‬
‫م ع َلي ْسهِ وَل َ ن َت ُْرك ُس ُ‬
‫سسل َ‬
‫ض لن ّس ُ‬
‫ى ل َ ن َن ْزِع ُ ُ‬
‫م ْ‬
‫سب ْ ُ‬
‫عسوَ ٍ‬
‫سب ِهِ ع ََرب ِي ّسسا‬
‫ه َ‬
‫ل ل ِل ّ ِ‬
‫سا ِ‬
‫وَهُوَ ِ‬
‫ه قَوّ َ‬
‫جعُ إ َِلى ن َ َ‬
‫ذى َ‬
‫م ً‬
‫سَباه ُ وَي َْر ِ‬
‫خ ْ‬
‫مت ُ ُ‬
‫م ِقي َ‬
‫ب وَل َك ِن ّ ُ‬
‫ن ال ْعََر ِ‬
‫ن ال ِب ِ ِ‬
‫م َ‬
‫م َ‬
‫ما َ‬
‫ن‪) .‬بيهقى‪ ،‬سنن الكبرى؛ کتاب السير‪ ،‬حديث ‪(18069‬‬
‫كا َ‬
‫كَ َ‬

‫سیدنا عمر فاروق نے کھڑے ہو کر )خطبہ دیتے ہوئے( فرمایا‪" ،‬عرب میں غلمی نہیں رہے گی‬
‫اور ہم ہر اسلم قبول کرنے والے کو اس کے آقا کی غلمی سے نکال لیں گے۔ ہم ہر غلم کا‬
‫فدیہ پانچ اونٹ مقرر کریں گے۔ ابو عبید کہتے ہیں کہ انہوں نے ان غلموں ک سے متعلسسق ارشسساد‬
‫فرمایا کہ ہم انہیں بلعوض غلمی سے نہیں نکالیں گے لیکن چونکہ وہ اسلم قبسسول کسسر چکسے‬
‫ہیں اس وجہ سے انہیں غلم بھی نہیں رہنے دیں گے۔ ی سہ اہہہل عسسرب تھہہے‪ ،‬ان کسسا فسسدیہ ان ک سے‬
‫مالکوں کے لئے پانچ اونٹ مقرر کیا گیا اور انہیں اپنے عرب خاندانوں میں جانے کسسی اجسسازت‬
‫دے دی گئی۔‬

‫حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے اس اقدام سے یسہ واضسح ہے کسہ آپ نسے ایسسا عسرب‬
‫نسل کے لئے نہیں کیا بلکہ عرب معاشرے میں جو بھی غلم باقی رہ گئے ت ھے‪ ،‬انہیسسں‬
‫آزاد کرنے کے لئے کیا۔ انہوں نے غلم کی آزادی کے لئے "عربیست" نہیسسں بلکسہ "اسسلم‬
‫لنے" کی شرط لگائی تھی۔ یہ محض ایک اتفاق تھا کہ اس وقت عرب میں جو غلم‬
‫موجود تھے‪ ،‬وہ عرب ہی تھے۔‬
‫بعد کے دور میں چونکہ مسلمانوں کے اندر نسل پرستی پھیل گئی تھی اس وجہ‬
‫سے آپ کے اس فرمان کو کہیں بعد میں بعض لوگوں نے نسل پرستی کا مسئلہ بنسسا‬
‫لیا اور کہنے لگے کہ اب عربوں کو غلم بنانا جائز نہیں ہے۔ جن افراد نے صرف قسسرآن‬
‫مجید کی سورۃ حجرات اور رسول اللہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم کسے خطبسہ حجسۃ‬
‫الوداع کا مطالعہ کیا ہے وہ اچھی طرح جسسانتے ہیسسں کسہ اسسسلم میسسں کسسسی نسسسل کسسو‬
‫کسی دوسری نسل پر فوقیت حاصل نہیں ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم‬
‫تمام انسانیت کی طرف مبعوث کئے گئے تھے اور جو ب ھی آپ پسسر ایمسسان ل سے آئے وہ‬
‫دوسرے مسلمان بھائی کے برابر ہے۔‬
‫اگر سیدنا عمر رضی اللہ عنہ مزید کچھ عرصہ زندہ رہتے تو امید کسسی جسسا سسسکتی‬
‫تھی کہ عرب معاشرے سے باہر بھی آپ غلمی کا خاتمہ کر دیتے۔ سیدنا عمسسر رضسسی‬
‫اللہ عنہ کی اصلحات پر بحث کرتے ہوئے ڈاکٹر اکرم بن ضیاء العمری لکھتے ہیں‪:‬‬
‫وقد كثر المكاتبون من الرقيق في خلفة عمسسر‪ ،‬فكسسانوا يسسساعدون تنفيسسذا ً لمسسر اللسسه‬
‫تعالى‪ ،‬كما أن الدولسسة كسسانت ترضسسخ للعبيسسد مسسن الغنسسائم والعطسساء‪ ،‬لتكسسون لهسسم مسسال‬
‫يعملون بتنميته حتى يتحرروا من الرق‪ .‬وقد ألسسزم سسسادتهم بتحريرهسسم إذا سسسددوا مسسا‬
‫تعهدوا به من مال‪ ،‬وكان مقدار الفداء حسب مهارة العبد وقد يبلسسغ ‪40,000‬۔ درهسسم‬
‫أحيانًا‪ .‬ولما تحسنت موارد بيت المال في خلفة عمر رضي اللسسه عنسسه قسسدم وصسسيته ‪-‬‬
‫قبل موته ‪ -‬بتحرير جميع الرقاء المسلمين في الدولة‪) .‬عمری‪ ،‬عصر الخلفۃ الراشدہ(‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کی خلفت کے زمانے میں غلموں میں سے مکسساتبت کرن سے والسسوں‬
‫کی تعداد بہت بڑھ چکی تھی۔ اللہ تعالی کے حکم کے نفاذ ک سے لئے حکسسومت مسسدد کیسسا کرتسسی‬
‫‪160‬‬

‫تھی۔ یہ اسی طرح تھا کہ غنیمت اور وظائف میں غلموں کو بھی حصہ دیا جاتسسا ت ھا تسساکہ ان‬
‫کے پاس مال آ جائے اور وہ ترقی کرتے ہوئے غلمی سے نجات حاصل کر کے آزاد ہو سسسکیں۔‬
‫ان کے آقاؤں پر یہ لزم تھا کہ معاہدے کے مطابق جب بھی غلم ادائیگی کر دے تو اسسسے آزاد‬
‫کر دیا جائے۔ مکاتبت کے فدیے کی رقم کا تعین غلم کی صلحیت و مہارت کسے مطسسابق ہوا‬
‫کرتا تھا جو بعض اوقات ‪ 40,000‬درہم تک پہنچ جایا کرتی تھی۔ سیدنا عمر رضسسی الل سہ عن سہ‬
‫کے دور خلفت میں بیت المال کی حالت جب بہت بہتر ہو گئی تو انہوں نے اپنی وفسسات سسے‬
‫پہلے وصیت کرتے ہوئے اعلن فرمایا کہ ملک میں موجود تمام مسلمان غلمسسوں کسسو آزاد کسسر‬
‫دیا جائے۔‬

‫آپ کے بعد سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کو آٹھ نو سال تک سکون سے کسسام کرنسے کسسا‬
‫موقع مل لیکن فتوحات کے سیلب کے باعث اس پر عمل کرنا ان کے لئے ممکسسن نسہ‬
‫رہا۔ اس کے بعد امت مسلمہ انارکی کا شکار ہو گئی اور سیدنا عثمان کا آخری اور‬
‫سیدنا علی رضی اللہ عنہما کا پورا دور ہی خانہ جنگی کی نظر ہو گیا۔‬
‫حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے اس فرمان کا نتیجہ یہ نکل کہ عرب معاشسسرے ک سے‬
‫تمام غلموں کو آزاد کر دیا گیا۔ اس حکم کو غلط سمجھ لینے کے باوجود بعسسد میسسں‬
‫بھی کم از کم یہ فائدہ تو ہوا کہ اس کے بعد عربوں کو غلم نہیں بنایا گیا۔‬

‫عرب س ے با ہر موجود غلموں س ے متعلق اصلحات‬
‫خلفاء راشدین کے دور میں صسسرف اٹ ھارہ سسسال کسے عرصسے میسسں موجسسودہ دور کسے‬
‫عراق‪ ،‬ایران‪ ،‬افغانستان اور پاکستان کے کچھ علقے‪ ،‬شام‪ ،‬اردن‪ ،‬فلسطین‪ ،‬لبنسسان‪،‬‬
‫ترکی کے کچھ علقے‪ ،‬مصر اور کچھ افریقی علقے فتح ہو چکسے ت ھے۔ جیسسسا کسہ ہم‬
‫بیان کر چکے ہیں کہ دنیا کے ان تمام علقوں میں غلمی اپنی پوری شدت کے سسساتھ‬
‫موجود تھی۔ یہی وجہ ہے کہ ان علقوں کی فتح کے ساتھ غلموں کی ایک ب ہت بسسڑی‬
‫آبسسادی اسسسلمی حکسسومت کسے زیسسر نگیسسں آ گئی ت ھی۔ ان غلمسسوں کسسی تعسسداد لزمسا ً‬
‫کروڑوں میں ضرور رہی ہو گی۔‬
‫اگر ان تمام غلموں کو بیک وقت آزادی عطا کر دی جاتی تو اس کسا نسستیجہ اس‬
‫کے سوا اور کچھ نہ نکلتا کہ لکھوں کی تعداد میں بے روزگار مردوں اور خسسواتین کسسا‬
‫ایک بہت بڑا طبقہ وجود میں آ جاتا جو کہ چور‪ ،‬ڈاکو‪ ،‬بھکاری اور طوائف بن کر اپنی‬
‫زندگی بسر کرنے پر مجبور ہو جاتے۔ ان غلموں کی آزادی کے لئے بھی وہی طریسسق‬
‫کار اختیار کیا گیا جو عرب میں موجود غلموں کے لئے اختیار کیا گیا تھا۔ اسلم کی‬
‫وہ تمام مراعات جن کا ذکر ہم پچھلے ابواب میں کر چکے ہیں‪ ،‬ان غلموں کسسو ب ھی‬
‫حاصل ہو گئیں۔‬
‫فوری طور پر ان غلموں کو بھی یہ حسق حاصسسل ہو گیسا کسہ ان کسے آقسا ان کسی‬
‫ضروریات کا خیال رکھیں۔ انہیں شادی کی اجازت دے دیں۔ ان کی عزت نفسسس کسسو‬
‫قائم رکھیں۔ ان غلموں کو وہ تمام قانونی اور معاشرتی حقوق حاصل ہو گئے جسسو‬
‫انہیں پہلے حاصل نہ تھے۔ اس کے ساتھ ہی ان کی آزادی کا دروازہ بھی کھل گیا۔‬
‫اسلم قبول کرنے والے نئے غلموں کو تو فورا ً خرید کر آزاد کیا جسسانے لگسسا۔ اس‬
‫کے علوہ بھی ہر مسلم یا غیر مسلم غلم کو یہ حق حاصل ہو گیا کہ وہ مکسساتبت ک سے‬
‫ذریعے اپنی آزادی خود خرید سکے۔ مسلمانوں کو ان کا دین یہی ترغیب دیتسا ہے کسہ‬
‫وہ اپنے غلموں کو بلمعاوضہ آزاد کر دیں۔ اس کے نسستیجے میسسں کسسثیر تعسسداد میسسں ان‬
‫مسلم و غیر مسلم غلموں کو آزادی بھی نصیب ہونے لگی۔ خود خلفاء راشدین نسے‬
‫مثال قائم کرتے ہوئے کثیر تعداد میں ایرانی اور رومی غلم آزاد کئے۔‬
‫یہی وجہ تھی کہ ان غلموں نے بالعموم اسلمی فتوحات کا خیر مقدم کیا۔ تاریخ‬
‫میں ایسے واقعات بھی ملتے ہیں کہ جنگ کے دوران دشمن کے غلم اسلمی لشسسکر‬
‫‪161‬‬

‫سے آ ملے اور انہوں نے دشمن کی اہم معلومات اسلمی لشکر تک پہنچا دیں۔ اسی‬
‫طرح بعض اوقات یہ غلم اسلمی لشکر کے گائیڈ کا کام ب ھی کیسسا کرت سے ت ھے۔ بسسسا‬
‫اوقات یہ لوگ اسلمی لشکر کا راستہ صاف کرنسے کسے لئے پلسسوں وغیسسرہ کسسی تعمیسسر‬
‫بھی کر دیا کرتے تھے۔‬
‫خلفت راشدہ کے دور میں ایسا کوئی سراغ نہیں ملتسسا کسہ ان غلمسسوں کسی بسسڑے‬
‫پیمانے پر ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقلی کی گئی ہو۔ اگر انہیسسں منتقسسل کیسسا ب ھی‬
‫گیا تو اس طریقے سے کہ ان کے خاندانوں میں کوئی تفریق پیدا نہیں کی گئی۔ عام‬
‫طور پر ان غلموں کو ان کی آبائی زمینوں ہی میں رکھا جاتا ج ہاں یسہ زراعسست کسے‬
‫عمل میں حصہ لیا کرتے تھے۔‬
‫ایڈورڈ گبن بیان کرتے ہیں کہ اسلم قبول کرت سے ہی ی سہ غلم‪ ،‬سسسماجی رتب سے ک سے‬
‫اعتبار سے آزاد مسلمانوں کے برابر آ کھڑے ہوا کرتے تھے۔‬
‫‪But the millions of African and Asiatic converts, who swelled the native band of the‬‬
‫‪faithful Arabs, must have been allured, rather than constrained, to declare their belief in‬‬
‫‪one God and the apostle of God. By the repetition of a sentence and the loss of a foreskin,‬‬
‫‪the subject or the slave, the captive or the criminal, arose in a moment the free and equal‬‬
‫‪companion of the victorious Moslems. (Edward Gibbon, The History of Decline & Fall of‬‬
‫) ‪Roman Empire, http://www.ccel.org‬‬

‫افریقہ اور ایشیا کے کروڑوں نئے مسلمان‪ ،‬جو صسساحب ایمسسان عربسسوں کسے سسساتھ شسسامل ہو‬
‫جاتے‪ ،‬انہیں قید رکھنے کی بجائے آزاد کر دیا جاتا اگر وہ اس بات کا اعلن کر دیتے کہ وہ ایک‬
‫خدا اور اس کے رسول پر یقین رکھتے ہیں۔ ایک کلمے کے دوہرانے اور ختنہ کروانے کے سسساتھ‬
‫ہی‪ ،‬آزاد یا غلم‪ ،‬قیدی یا مجرم‪ ،‬ایک لمحے ہی میں آزاد ہو کر فتح پانے والے مسلمانوں کسے‬
‫برابر آ کھڑے ہوا کرتے تھے۔‬

‫‪162‬‬

‫باب ‪ :12‬اسلم کی انسداد‬
‫غلمی کی م ہم ک ے اثرات‬
‫رسسسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ و ٰالسہ وسسسلم نسے غلمسسوں کسی آزادی کسسی جسسو تحریسسک )‬
‫‪ (Abolitionist Movement‬شروع کی تھی‪ ،‬اس کے اثرات نہایت ہی مثبت نکل سے۔ آپ‬
‫کی اس تحریک کے نتیجے میں کثیر تعداد میں غلمسسوں کسسو آزادی نصسسیب ہوئی۔ بسے‬
‫شمار غلموں نے مکاتبت کے ذریعے آزادی حاصل کی۔ جو غلم باقی رہ گئے‪ ،‬ان کسسو‬
‫ان کے معاشرتی‪ ،‬معاشی اور معاشرتی حقوق دی سے گئے اور ان ک سے حقسسوق ان تسسک‬
‫پہنچانے کو خلفاء راشدین نے اپنی ذمہ داری قرار دیا۔ انسسسداد غلمسسی کسسی اس م ہم‬
‫کے نتائج کو ہم حسب ذیل عنوانات کے تحت بیان کر سکتے ہیں۔‬
‫• غلموں کی آزادی کی تحریک کے صحابہ و تابعین پر اثرات‬
‫• آزاد کردہ غلموں سے متعلق اعداد و شمار‬
‫• انسداد غلمی کی تحریک میں خلفاء راشدین کا کردار اور اس کے نتائج‬
‫• غلموں کے اسٹیٹس میں اضافے کے نتائج‬

‫غلموں کی آزادی کی تحریک ک ے‬
‫صحاب ہ و تابعین پر اثرات‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‪ ،‬آپ کے خاندان اور آپ کے قریبی سسساتھیوں ن سے‬
‫اپنے طرز عمل سے بکثرت غلم آزاد کرنے کسسی جسسو مثسسال قسائم کسی ت ھی‪ ،‬اس کسے‬
‫نتیجے میں مسلمانوں میں غلمسسوں کسسو آزاد کرن سے اور غلمسسوں میسسں آزادی حاصسسل‬
‫کرنے کی زبردست تحریک پیدا ہوئی۔ یہاں ہم بطور مثال چند مشہور صحابہ کا ذکسسر‬
‫کر رہے ہیں‪:‬‬

‫ابوبکر صدیق‬
‫سیدنا ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے جب اسلم قبسسول کیسسا تسسو آپ ک سے پسساس کسسثیر‬
‫تعداد میں جمع کی گئی دولت موجود تھی۔ آپ نے اس دولت کا بسسڑا حص سہ غلمسسوں‬
‫کی آزادی پر صرف کیا۔ ابن ہشام بیان کرتے ہیں کہ غلم آزاد کرنے کی وجہ سے ان‬
‫کا لقب "عتیق" مشہور ہو گیا تھا۔ انہوں نے سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ کے آزاد کردہ‬
‫متعدد غلموں کا ذکر اپنی سیرت کی کتسساب میسسں کیسسا ہے۔ غلمسسوں کسسی آزادی کسے‬
‫پیچھے کیا مقصد کار فرما تھا‪ ،‬اس کا اندازہ اس روایت سے لگایا جا سکتا ہے۔‬
‫َ‬
‫س ‪ ،‬قَسسا َ‬
‫عي َ‬
‫ل‪:‬ا ْ‬
‫س‬
‫ن قَي ْس‬
‫شست ََرى أ َب ُسسو ب َك ْسرٍ ب ِل َل ً ب ِ َ‬
‫ما ِ‬
‫مَعاوِي َ َ‬
‫َ‬
‫نإ ْ‬
‫خ ْ‬
‫س َ‬
‫حد ّث ََنا أُبو ُ‬
‫ل ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫ة ‪ ،‬عَ ْ‬
‫مس ِ‬
‫ٍ‬
‫ل ‪ :‬يسسا أ َ‬
‫أ َواق ‪ ،‬ث ُم أ َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ٌ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫خ سذ َِني‬
‫مسسا أ َع ْت َ ْ‬
‫س‬
‫ن‬
‫ك‬
‫ن‬
‫إ‬
‫ر‬
‫س‬
‫ك‬
‫ب‬
‫سا‬
‫س‬
‫ب‬
‫ل‬
‫ب‬
‫ه‬
‫ل‬
‫ل‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ف‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫ه‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ت‬
‫ع‬
‫ْ‬
‫قتن ِسسي ل ِت َت ّ ِ‬
‫ت إن َّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ ِ‬
‫ُ‬
‫ّ‬
‫ٍ ِ‬
‫َ ٍ‬
‫َ‬
‫ل ل ِل ّسهِ ‪ ،‬قَسسا َ‬
‫مس ُ‬
‫ل ‪ :‬فَب َك َسسى‬
‫ما أ َع ْت َ ْ‬
‫خذ ِْني َ‬
‫َ‬
‫خازًِنا ‪ ,‬فَا ِت ّ ِ‬
‫خازًِنا وَإ ِ ْ‬
‫قتِني ل ِل ّهِ فَد َع َْني فَأع ْ َ‬
‫ن ك ُْنت إن ّ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ه‪) .‬مصنف ابن ابي شيبة‪ ،‬حديث ‪(33002‬‬
‫م قال ‪ :‬ب َل أع ْت َ ْ‬
‫قُتك ل ِل ِ‬
‫أُبو ب َكرٍ ‪ ،‬ث ّ‬
‫سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے بلل کو پانچ اوقیہ )چاندی( ک سے بسسدلے خریسسدا اور انہیسسں‬
‫آزاد کر دیا۔ آپ فرماتے ہیں کہ بلل مجھ سے کہنے لگے‪" ،‬اے ابوبکر! اگر آپ نے مج ھے )اپن سے‬
‫‪163‬‬

‫مال کا( خزانچی بنانے کے لئے آزاد کیا ہے تو مجھے خزانچی بنا دیجیے۔ اگر آپ نے مجھے اللسسہ‬
‫کے لئے آزاد کیا ہے تو مجھے چھوڑ دیجیے کہ میں اللہ کے لئے عمل کروں۔" ابوبکر یہ سسسن کسسر‬
‫رونے لگے اور فرمایا‪" ،‬میں نے تو آپ کو صرف اللہ ہی کے لئے آزاد کیا تھا۔"‬

‫سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کو چن چن کر کمزور غلم آزاد کرنےکا اتنا شوق‬
‫تھا کہ انہوں نے اس معاملے میں اپنے والسسد ابوقحسسافہ رضسسی اللسہ عنسہ )جسسو اس وقسست‬
‫اسلم نہ لئے تھے( کی تنبیہ کو بھی اہمیت نہ دی۔‬
‫حدثنا أحمد بن سهل الفقيه ببخارا حدثنا صالح بسسن محمسسد بسسن حسسبيب الحسسافظ حسسدثنا‬
‫سعيد بن يحيى الموي حدثني عمي عبد الله بن سعيد عن زيادة بن عبد الله البكائي‬
‫عن محمد بن إسحاق قال حدثني محمد بن عبد الله بن أبي عتيق عن عامر بن عبسسد‬
‫الله بن الزبير عن أبيه قال قال أبو قحافة لبي بكر أراك تعتق رقابا ضعافا‪ ،‬فلو إنسسك‬
‫إذ فعلت ما فعلت أعتقت رجال جلدا يمنعونك ويقومون دونك۔ فقال أبو بكسسر يسسا أبسست‬
‫إني إنما أريسسد مسا أريسد لمسا۔ نزلست هسذه اليسسة فيسسه فأمسا مسن أعطسى واتقسى وصسدق‬
‫بالحسنى فسنيسره لليسرى إلى قوله عز وجل } وما لحد عنده من نعمة تجسسزى إل‬
‫ابتغاء وجه ربه العلى ولسوف يرضى { هذا حديث صحيح علسسى شسسرط مسسسلم ولسسم‬
‫يخرجاه‪) .‬مستدرک حاکم‪ ،‬حديث ‪(3942‬‬
‫سیدنا زبیر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ابو قحافہ نے ابوبکر سے کہا‪" ،‬میں دیک سھ ر ہا ہوں‬
‫کہ تم بہت سے کمزور غلموں کو آزاد کر رہے ہو۔ اگر تمہیں یہ کرنا ہی ہے تسسو جسسوان مسسردوں‬
‫کو آزاد کرو جو تمہاری حفاظت کریں اور تمہاری حمایت میں کھڑے ہوں۔" ابسسوبکر ن سے ک ہا‪،‬‬
‫"ابا جان! میں دنیاوی فائدے کے لئے ایسا نہیں کرتا" اس پر یہ آیت نازل ہوئی ک سہ "جسسس ن سے‬
‫اپنا مال )اللہ کسسی راہ میسسں( خسسرچ کیسسا‪ ،‬اور پرھیزگسساری اختیسسار کسسی‪ ،‬اور نیسسک بسسات کسسو سسسچ‬
‫سمجھا‪ ،‬اس کے لئے ہم نیکی کو آسان کر دیں گے۔" )سورۃ والیل(‬

‫عمر فاروق‬
‫سیدنا عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے بکثرت غلم آزاد کئے اور اپنسسی عمسسر ک سے آخسسری‬
‫حصے میں آپ کے پاس جو غلم موجود تھے‪ ،‬ان سب کو آزاد کر دیا۔ ) دیکھی سے مسسسند‬
‫احمد‪ ،‬باب عمر بن خطاب( نافع کہتے ہیں کہ سیدنا عمر نے اپنی زندگی میسسں ایسسک ہزار‬
‫سے زائد غلم آزاد کئے۔ )دیکھیے مرعاۃ المفاتیح شرح مشکوۃ(‬
‫غلموں کو آزادی دیتسے وقسست آپ نسے بحیسسثیت مسسسلمانوں کسے لیسڈر کسے‪ ،‬ایسسسی‬
‫مثالیں قائم کیں جو معاشرے کے دیگر افراد کے لئے قابل رشک تھیں۔ ایک مرتبہ تسسو‬
‫ایسا ہوا کہ غلم کو آزادی دیتے وقت آپ کے پاس رقم نہ تھی۔ آپ نے اپنسسی بیسسٹی ام‬
‫المومنین سیدہ حفصہ رضی اللہ عنہا سے قرض لے کر اپن سے غلم کسسو ی سہ رقسسم دی ک سہ‬
‫اس سے وہ کاروبار کر سکے۔ یہ سب آپ نسے اپنسسی ذاتسسی حیسسثیت سسے کیسسا۔ اس کسے‬
‫علوہ بحیثیت خلیفہ آپ بیت المال سے غلم خرید کر آزاد کیا کرتے تھے اور ضرورت‬
‫مند مکاتبوں کی مدد کیا کرتے تھے۔‬

‫عثمان غنی‬
‫سیدنا عثمان غنی رضی اللہ عنہ کا بھی یہی حال تھا۔ اللہ تعالی نے آپ کو بہت سسسی‬
‫دولت سے نوازا تھا جسے آپ غلموں کی آزادی پر خرچ کیا کرتے تھے۔ آپ کسسے آزاد‬
‫کردہ غلم ابو سعید بیان کرتے ہیسسں ک سہ آپ ن سے ایسسک ہی وقسست میسسں بیسسس غلم آزاد‬
‫فرمائے۔ )مسند احمد‪ ،‬باب عثمان بن عفان( آپ خود بیان فرماتے ہیں‪:‬‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫م ْ‬
‫م بن َداوُد َ ال ْ ِ‬
‫حد ّث ََنا ال ْ ِ‬
‫جّبارِ ‪َ ،‬‬
‫ضُر بن ع َب ْد ِ ال ْ َ‬
‫سوَد ِ الن ّ ْ‬
‫صرِيّ ‪َ ،‬‬
‫ق َ‬
‫َ‬
‫دا ُ‬
‫حد ّث ََنا أُبو ال ْ‬
‫م ْ‬
‫حسسد ّث ََنا اْبسس ُ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫عس‬
‫‪،‬‬
‫ث‬
‫د‬
‫س‬
‫ح‬
‫ي‬
‫ي‬
‫مس‬
‫ه‬
‫ن‬
‫ال‬
‫ر‬
‫و‬
‫ث‬
‫با‬
‫أ‬
‫ت‬
‫ع‬
‫م‬
‫س‬
‫‪:‬‬
‫ل‬
‫قا‬
‫‪،‬‬
‫ي‬
‫ر‬
‫ف‬
‫عا‬
‫م‬
‫ل‬
‫ا‬
‫رو‬
‫م‬
‫ع‬
‫بن‬
‫د‬
‫زي‬
‫ي‬
‫ني‬
‫ث‬
‫د‬
‫ح‬
‫‪،‬‬
‫ة‬
‫ع‬
‫هي‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ّ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ّ ُ َ ّ‬
‫َ ِ ُ‬
‫َ ّ‬
‫لَ ِ َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َْ ْ ُ َ ْ‬
‫َ َ ِ ّ‬
‫ٍ‬
‫ٍ‬
‫َ‬
‫ه ‪َ ،‬قا َ‬
‫عن ْد َ َرّبي ع َ ْ‬
‫ة‬
‫ل ‪ :‬لَ َ‬
‫ن بن ع َ ّ‬
‫قد ِ ا ْ‬
‫ت ِ‬
‫شًرا ‪ ،‬إ ِّني ل ََراب ِعُ أْرب َعَ ٍ‬
‫ن َر ِ‬
‫فا َ‬
‫ما َ‬
‫خت َب َأ ُ‬
‫ه ع َن ْ ُ‬
‫ي الل ّ ُ‬
‫ع ُث ْ َ‬
‫ض َ‬
‫َ‬
‫ت‬
‫ت يَ ِ‬
‫ت ‪َ ،‬ول وَ َ‬
‫ِفي ال ِ ْ‬
‫مْنسذ ُ َبساي َعْ ُ‬
‫جسي ‪ُ ،‬‬
‫ميِنسي ع َلسى فَْر ِ‬
‫ضسعْ ُ‬
‫من ّي ْ ُ‬
‫ت ‪َ ،‬ول ت َ َ‬
‫ما ت َعَن ّي ْ ُ‬
‫سلم ِ ‪ ،‬وَ َ‬
‫‪164‬‬

‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫سو َ‬
‫مع َ ٌ‬
‫ي ُ‬
‫من ْذ ُ أ ْ‬
‫ه ع َل َي ْهِ وَ َ‬
‫َر ُ‬
‫ت ِإل وَأن َسسا أع ْت ِسقُ‬
‫م ُ‬
‫س سل َ ْ‬
‫ة ُ‬
‫ج ُ‬
‫مّر ْ‬
‫ما َ‬
‫م ‪ ،‬وَ َ‬
‫سل ّ َ‬
‫صّلى الل ّ ُ‬
‫ل الل ّهِ َ‬
‫ت ع َل َ ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‪.‬‬
‫دي فأع ْت ِ َ‬
‫ن ِ‬
‫ِفيَها َرقب َ ً‬
‫عن ْ ِ‬
‫ت فِسسي َ‬
‫ن ل ي َكو َ‬
‫ة ‪ِ ،‬إل أ ْ‬
‫جاه ِل ِي ّسةٍ َول إ ِ ْ‬
‫قَها ب َعْد َ ذ َل ِك ‪َ ،‬ول َزن َي ْ ُ‬
‫سسسل ٍ‬
‫)طبرانی؛ معجم الکبير(‬
‫)جب باغیوں نے سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کے گھر کا محاصرہ کیا اور ان کے گھر کھانسسا اور‬
‫پانی نہ پہنچنے دیا تو انہوں نے باغیوں سے خطاب کرتے ہوئے( فرمایا‪ :‬میں دس ایسسسی بسساتیں‬
‫چھپاتا رہا ہوں جو میرے رب ہی کو معلوم ہیں۔ میں چوتھا شخص ہوں جس نے اسلم قبول‬
‫کیا‪ ،‬میں نے کبھی کسی پر ظلم نہیں کیا اور نہ ہی کسی چیز کی خواہش کی‪ ،‬نہ ہی میں نے‬
‫کبھی اپنے دائیں ہاتھ سے شرمگاہ کو چھوا ‪ ،‬جب سے رسول اللہ صلی الل سہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم‬
‫کی میں نے بیعت کی تو مجھ پر کوئی ایسا جمعہ نہیں گزرا ہے جب میں نے غلم آزاد نسہ کیسسا‬
‫ہو سوائے اس کے کہ میرے پاس کوئی غلم موجود ہی نہ ہو‪ ،‬میں نے نہ تو کبھہہی دور جسساہلیت‬
‫میں اور نہ ہی اسلم لنے کے بعد بدکاری کا ارتکاب کیا ہے۔"‬

‫سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ نے تراسی بسسرس کسسی عمسسر پسسائی۔ اس قبسسول کرنسے کسے‬
‫وقت آپ کم وبیش پچپن برس زندہ رہے۔ اگر ہر جمعے کو غلم آزاد کرنے کا حساب‬
‫لگایا جائے تو آپ کے آزاد کردہ غلموں کی تعسسداد ‪ 2860‬بنسستی ہے۔ اس میسسں ایس سے‬
‫مواقع بھی آئے ہیں جب آپ نے ایک سے زائد غلمسسوں کسسو آزادی دی ت ھی۔ اس کسسی‬
‫ایک مثال ہم اوپر بیان کر چکے ہیں۔‬

‫علی المرتضی‬
‫سیدنا علی المرتضی اور فاطمہ رضی اللہ عنہما کسسی زنسسدگی زیسسادہ تسسر غربسست میسسں‬
‫گزری تھی۔ سیدنا علی رضی اللہ عنہ زیادہ تر محنت مزدوری کر کے گسسزر بسسسر کیسسا‬
‫کرتے تھے۔ اس کے باوجود ان میں غلموں کو آزادی دینے کا بے پناہ جذبہ موجود تھا۔‬
‫غربت کے باوجود رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم کسسی تربیسست اور آپ ک سے غلم‬
‫آزاد کرنے کے شوق کا اندازہ اس روایت سے لگایا جا سکتا ہے۔‬
‫أخبرنا عبيد الله بن سعيد ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثنا معاذ بن هشام ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثني أبي عن يحيسسى‬
‫بن أبي كثير ‪ ،‬قال ‪ :‬حدثني زيد ‪ ،‬عن أبي سلم ‪ ،‬عن أبي أسسسماء الرحسسبي أن ثوبسسان‬
‫مولى رسول الله صلى الّله عليه وسلم حدثه قال جاءت ابنة هبيرة إلى رسول اللسسه‬
‫وفي يدها فطخ فقال كذا في كتاب أبي أي خواتيم ضخام فجعل رسول اللسسه يضسسرب‬
‫يدها۔ فدخلت على فاطمة بنت رسول الله تشسسكو إليهسسا السسذي صسسنع بهسسا رسسسول اللسسه‬
‫صلى الّله عليه وسلم۔ فانتزعت فاطمة سلسسسلة فسي عنقهسا مسن ذهسب وقسالت هسسذه‬
‫أهداها إلي أبو حسن فدخل رسول الله صلى الّله عليه وسسسلم والسلسسسلة فسسي يسسدها‬
‫فقال يا فاطمة أيغرك أن يقول الناس ابنة رسول الله وفي يدها سلسلة من نسسار ثسسم‬
‫خرج ولم يقعد فأرسلت فاطمة بالسلسلة إلى السوق فباعتها واشترت بثمنها غلمسسا‬
‫وقال مرة أخرى عبدا وذكر كلمة معناها فأعتقته فحدث بذلك وقال الحمد للسسه السسذي‬
‫نجسسى فاطمسسة مسسن النسسار ‪) .‬سسسنن الکسسبری از نسسسائی‪ ،‬کتسساب الزينسسة‪ ،‬حسسديث ‪،9378‬‬
‫مستدرک حاکم‪ ،‬حديث ‪(4725‬‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے آزاد کردہ غلم ثوبان رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں‪ ،‬کہ‬
‫ابن ھبیرہ کی بیٹی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں آئیں اور ان کے ہاتھ میسسں‬
‫موٹی سی انگوٹھی تھی۔ )اسے ناپسند فرماتے ہوئے( رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے‬
‫ان کے ہاتھ پر )بطور تادیب ہلکی سی( ضرب لگائی۔ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‬
‫کی بیٹی فاطمہ رضی اللہ عنہا کے پاس چلی گئیں اور رسول اللہ صلی اللہ علی سہ و ٰال سہ وسسسلم‬
‫کے اس عمل کی شکایت کرنے لگیں۔ وہ سیدہ سے کہہ رہی تھیسسں کسہ آپ نسے اپنسے گلسے میسسں‬
‫سونے کی ایک چین کیوں پہن رکھی ہے؟‬
‫سیدہ فاطمہ کہنے لگیں‪" ،‬یہ چین تو مجھے )میرے خاوند( ابو الحسن علی رضسسی اللسہ عنسہ نسے‬
‫تحفتا ً دی تھی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ان کے گھر میں داخل ہوئے تو سیدہ نے یہ‬
‫زنجیر اتار کر ہاتھ میں پکڑی ہوئی تھی۔ آپ نے ارشاد فرمایا‪" ،‬اے فاطمہ! کیا تم یہ چاہتی ہو‬
‫کہ لوگ یہ کہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی بیٹی کے ہاتھ میسسں آگ کسسی زنجیسسر‬
‫‪165‬‬

‫ہے۔" یہ فرما کر آپ بغیر بیٹھے ان کے گھر سے نکل گئے۔ سیدہ نے وہ زنجیر بازار میں بھیجی‬
‫اور اسے بیچ کر اس کا ایک غلم خریدا اور اسے آزاد کر دیا۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬اللہ کا شکر ہے‬
‫جس نے فاطمہ کو اس آگ سے نجات دے دی ہے۔"‬

‫عائش ہ صدیق ہ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی ازواج مط ھرات ن سے ب ھی بکسسثرت غلم آزاد‬
‫کرنے کی مثال قائم کی۔ ام المومنین سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کو تو غلموں کسسی‬
‫آزادی سے خصوصی دلچسپی تھی۔ حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ و ٰالسہ وسسسلم کسی‬
‫زندگی میں آپ کے گھر والوں کے مالی وسائل بہت محسسدود ت ھے۔ آپ اپن سے خانسسدان‬
‫کے لئے ایسا مال کبھی قبول نہ فرماتے تھے جو کسی نے اللہ تعالی کی راہ میں خرچ‬
‫کیا ہو۔ اس مال کو آپ نے ضرورت مندوں یا دین کی اشاعت کے لئے خرچ کرنے کا‬
‫حکم دیا۔ ان محدود مالی وسائل کے باوجود کہ جب آپ کے گ ھر میسسں کئی کئی دن‬
‫چولہا نہ جلتا تھا‪ ،‬سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا نے بریرہ رضی اللسہ عن ہا نسسامی کنیسسز کسسو‬
‫خرید کر آزد کیا۔ یہ حدیث‪ ،‬صحاح ستہ کسی تمسام کتسب میسں ب ہت سسے مقامسات پسر‬
‫موجود ہے۔ ایک مثال یہ ہے‪:‬‬
‫ة‪ ،‬ع َ َ‬
‫مال ِ ٌ‬
‫عائ ِ َ‬
‫ن هِ َ‬
‫ي صسلى اللسه عليسه‬
‫ن َ‬
‫ش َ‬
‫ن ع ُْروَ َ‬
‫ن أِبي ِ‬
‫َ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫ة َزوِْج الن ِّبس ّ‬
‫ه‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ْ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫شام ِ ب ْ ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫وسلم أ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ق‪ ،‬فِسسي ك ُس ّ‬
‫ل‬
‫وا‬
‫أ‬
‫ع‬
‫س‬
‫س‬
‫ت‬
‫سى‬
‫س‬
‫ل‬
‫ع‬
‫سي‬
‫س‬
‫ل‬
‫ه‬
‫أ‬
‫ت‬
‫ب‬
‫ت‬
‫كا‬
‫ني‬
‫إ‬
‫‪:‬‬
‫ت‬
‫ل‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ف‬
‫ة‬
‫ر‬
‫ري‬
‫ب‬
‫ت‬
‫َ‬
‫ء‬
‫جا‬
‫‪:‬‬
‫ت‬
‫ل‬
‫قا‬
‫ها‬
‫ن‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ْ ُ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ َ ِ َ‬
‫ْ ِ َ ٍ‬
‫عام أ ُوقي َة‪ ،‬فَأ َ‬
‫ة ‪ :‬إن أ َحسب أ َهْل ُسك أ َن أ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫عسد َد ْت َُها‪,‬‬
‫هس‬
‫ل‬
‫ها‬
‫د‬
‫س‬
‫ع‬
‫شس‬
‫ئ‬
‫عا‬
‫ت‬
‫ل‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ف‬
‫نى‪.‬‬
‫ني‬
‫عي‬
‫ك َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫َ ٍ ْ َِ ٌ‬
‫م ع َْنس ِ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ُ ْ‬
‫ْ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫وَي َ ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫وا ع َلي ْهَسسا‪،‬‬
‫ريسَرة ُ إ ِلسسى أهْل ِهَسسا فَ َ‬
‫ن ِلي وَلؤ ُ ِ‬
‫كو َ‬
‫ت لُهس ْ‬
‫قسسال ْ‬
‫ت‪ .‬فَسذ َهَب َ ْ‬
‫ك فَعَل ُ‬
‫م ذ َل ِسك‪ ،‬فَسأب َ ْ‬
‫ت بَ ِ‬
‫َ‬
‫سو ُ‬
‫ت ل َِعائ ِ َ‬
‫م‬
‫س‪ ،‬فَ َ‬
‫شس َ‬
‫ن ِ‬
‫ت ِ‬
‫ة إن ّسسي قَسد ْ ع ََر ْ‬
‫ل الل ّهِ َ‬
‫فَ َ‬
‫عن ْد ِ أهْل َِها وََر ُ‬
‫ت ع َل َي ْهِس ْ‬
‫ضس ُ‬
‫قسسال َ ْ‬
‫جاَء ْ‬
‫جال ِ ٌ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن يَ ُ‬
‫معَ ذ َل ِ َ‬
‫ذ َل ِ َ‬
‫سسسو ُ‬
‫ه‬
‫سسأل ََها‪ ،‬فَسأ ْ‬
‫س ِ‬
‫كو َ‬
‫ى‪ ،‬إ ِل ّ أ ْ‬
‫ل الل ّسهِ ‪ r‬فَ َ‬
‫ك َر ُ‬
‫م‪ .‬فَ َ‬
‫خب ََرت ْ ُ‬
‫ن ال ْوَل َُء ل َهُ ْ‬
‫ك فَأب َ ْ‬
‫وا ع َل ّ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫سو ُ‬
‫قا َ‬
‫ذيَها َوا ْ‬
‫عائ ِ َ‬
‫م السوَل ََء‪،‬‬
‫ة‪ ،‬فَ َ‬
‫ل اللهِ صلى اللسسه عليسسه وسسسلم‪ُ » :‬‬
‫َ‬
‫ش ُ‬
‫شست َرِ ِ‬
‫خس ِ‬
‫ل َر ُ‬
‫طي لهُس ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫سو ُ‬
‫عائ ِ َ‬
‫ه‬
‫ن أع ْت َقَ «‪ .‬فَ َ‬
‫ت َ‬
‫ش ُ‬
‫ح ِ‬
‫س‪ ،‬فَ َ‬
‫م َقا َ‬
‫م َر ُ‬
‫م سد َ الل س َ‬
‫ة‪ ،‬ث ُ ّ‬
‫فعَل ْ‬
‫ما الوَل َُء ل ِ َ‬
‫فَإ ِن ّ َ‬
‫م ْ‬
‫ل اللهِ ِفي الّنا ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ً‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ما َبا ُ‬
‫م َقا َ‬
‫ن ُ‬
‫ل يَ ْ‬
‫ب‬
‫وَأث َْنى ع َلي ْ ِ‬
‫شت َرِطو َ‬
‫ل رِ َ‬
‫ما ب َعْ ُ‬
‫شُروطا لي ْ َ‬
‫س ْ‬
‫د‪ ،‬فَ َ‬
‫ل‪»:‬أ ّ‬
‫ه‪ ،‬ث ُ ّ‬
‫ت ِفسسي ك َِتسسا ِ‬
‫جا ٍ‬
‫ما َ‬
‫ب الل ّهِ فَهُوَ َباط ِس ٌ‬
‫ة َ‬
‫ن َ‬
‫ضسساُء‬
‫مئ َ َ‬
‫ش سْر ٍ‬
‫ن ِ‬
‫شْر ٍ‬
‫ن ِ‬
‫الل ّ ِ‬
‫ط‪ ،‬قَ َ‬
‫ن ك َسسا َ‬
‫ل‪ ،‬وَإ ِ ْ‬
‫كا َ‬
‫ه‪َ ،‬‬
‫س ِفي ك َِتا ِ‬
‫ط ل َي ْ َ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫شْر ُ‬
‫ق‪ ،‬وَ َ‬
‫ن أع ْت َقَ «‪) .‬موطاء مالک‪ ،‬کتاب العتسسق و‬
‫الل ّهِ أ َ‬
‫ما ال ْوَل َُء ل ِ َ‬
‫ق‪ ،‬وَإ ِن ّ َ‬
‫ط الل ّهِ أوْث َ ُ‬
‫ح ّ‬
‫م ْ‬
‫الولء‪ ،‬حديث ‪ ،2265‬بخاری‪ ،‬کتاب الشرائط‪ ،‬حديث ‪(2729‬‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زوجہ عائشہ رضی اللسہ عن ہا بیسان کرتسی ہیسں‪ :‬بریسرہ میسرے‬
‫پاس آئیں اور کہنے لگیں‪" ،‬میں نے اپنے مالک سے نو اوقیہ چاندی کے بدلے آزادی خریدنے کسسا‬
‫معاہدہ کیا ہے۔ ہر سال ایک اوقیہ کی ادائیگی ضروری ہے۔ میری کچھ مدد کیجیے۔" عائشہ ن سے‬
‫فرمایا‪" ،‬اگر وہ پسند کریں تو میں انہیں تمہاری طرف سے پوری قیمسست اکٹ ھی ادا کسسر کسے‬
‫آزاد کر دوں اور تمہارا ولء کا رشتہ مجھ سے قائم ہو جائے۔" بریرہ اپنے مالک کے پاس گئیسسں‬
‫اور ان سے یہی بات کہی۔ انہوں نے انکار کر دیا۔‬
‫اب وہ واپس ہوئیں اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ب ھی وہیسسں تشسسریف فرمسسا ت ھے۔‬
‫انہوں نے پوری بات سیدہ عائشہ کو بتا دی۔ یہ سن کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے‬
‫لوگوں کے سامنے خطبہ دیا‪ ،‬اس میں اللہ تعالی کی حمد و ثنسا بیسسان کرنسے کسے بعسسد فرمایسسا‪،‬‬
‫"لوگوں کو کیا ہو گیا ہے کہ وہ ایسی شرائط عائد کر رہے ہیں جن کی اجازت اللہ کسے قسسانون‬
‫میں نہیں دی گئی۔ جو شرط بھی اللہ کے قانون کے خلف ہو‪ ،‬وہ باطل ہے اگرچہ ایسسسی سسسو‬
‫شرائط ہوں۔ اللہ کا فیصلہ ہی حق ہے اور اللہ ہی کی شرائط سسسب سسے زیسسادہ قابسسل اعتمسساد‬
‫ہیں۔ ولء کا رشتہ تو آزاد کرنے والوں کے ساتھ قائم ہوتا ہے۔"‬

‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے بعسسد آپ ک سے خلفسساء راشسسدین آپ کسسی ازواج‬
‫مطہرات کا بہت خیال رکھا کرتے تھے اور باقاعدگی سے انہیسسں وظسسائف بھیجسسا کرتسے‬
‫تھے۔ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا ان وظائف کو زیادہ تسسر غلمسسوں کسسی آزادی ک سے لئے‬
‫خرچ کیا کرتی تھیں۔ دو مزید واقعات ملحظہ فرمائیے‪:‬‬
‫َ‬
‫مال ِ ٌ‬
‫ه َقا َ‬
‫سِعي ٍ‬
‫ل ‪ :‬ت َوَّفى ع َب ْد ُ الّر ْ‬
‫ن يَ ْ‬
‫وَ َ‬
‫ن َ‬
‫ح َ‬
‫د‪ ،‬أن ّ ُ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫ن بْ ُ‬
‫ك‪ ،‬ع َ ْ‬
‫ن أِبي ب َك ْرٍ ِفي ن َوْم ٍ‬
‫م ِ‬
‫حَيى ب ْ ِ‬
‫‪166‬‬

‫ة‪َ .‬قسا َ‬
‫عائ ِ َ‬
‫ل‬
‫ه‪ ،‬فَأ َع ْت َ َ‬
‫ه َ‬
‫ي صسسلى اللسه عليسه وسسسلم رَِقابسا ً ك َِثيسَر ً‬
‫شس ُ‬
‫ة َزوْ ُ‬
‫ت ع َْنس ُ‬
‫ق ْ‬
‫م ُ‬
‫َنا َ‬
‫ج الن ِّبس ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ٌ‬
‫مال ِك ‪ :‬وَهَ َ‬
‫ي فِسسي ذ َل ِسك‪) .‬موطسساء مالسسک‪ ،‬کتسساب العتسسق و السسولء‪،‬‬
‫س ِ‬
‫ح ّ‬
‫ذا أ َ‬
‫ما َ‬
‫مع ْ ُ‬
‫ب َ‬
‫َ‬
‫ت إ ِل ّ‬
‫حديث ‪(2262‬‬
‫یحیی بن سعید بیان کرتے ہیں کہ )سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے بھائی( عبدالرح ٰمن بن ابسسی‬
‫بکر رضی اللہ عنہ نیند کی حالت میں فوت ہو گئے۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسسسلم کسسی زوج سہ‬
‫سیدہ عائشہ نے ان کی طرف سے کثیر تعداد میں غلم ّآزاد کئے۔ مالک کہتے ہیں ک سہ ی سہ سسسب‬
‫سے اچھی بات ہے جو اس ضمن میں میں نے سنی ہے۔‬

‫حدثنا عبد الله بن يوسف‪ :‬حدثنا الليث قال‪ :‬حدثني أبو السود‪ ،‬عن عروة بسسن الزبيسسر‬
‫قال‪ :‬كان عبد الله بن الزبير أحب البشسسر إلسسى عائشسسة بعسسد النسسبي صسسلى اللسسه عليسسه‬
‫وسلم وأبي بكر‪ ،‬وكان أبر الناس بها‪ ،‬وكانت ل تمسك شيئا مما جاءها من رزق اللسسه‬
‫إل تصدقت‪ ،‬فقال ابن الزبير‪ :‬ينبغي أن يؤخذ على يديها‪ ،‬فقسسالت‪ :‬أيؤخسسذ علسسى يسسدي‪،‬‬
‫علي نذر إن كلمته‪ ،‬فاستشفع إليها برجال من قريش‪ ،‬وبأخوال رسول الله صلى الله‬
‫عليه وسلم خاصة فامتنعت‪ ،‬فقال له الزهريون‪ ،‬أخوال النبي صلى الله عليه وسسسلم‪،‬‬
‫منهم عبد الرحمن بسسن السسسود ابسسن عبسسد يغسسوث‪ ،‬والمسسسور بسسن مخرمسسة‪ :‬إذا اسسستأذنا‬
‫فاقتحم الحجاب‪ ،‬ففعل فأرسل إليها بعشر رقاب فأعتقهم‪ ،‬ثم لم تزل تعتقهم‪ ،‬حسستى‬
‫بلغت أربعين‪ ،‬فقالت‪ :‬وددت أني جعلت حين حلفت عمل أعمله فأفرغ منسسه‪ .‬بخسساری‪،‬‬
‫کتاب الفضائل‪ ،‬حديث ‪(3505‬‬
‫)سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے بھانجے( عروہ بن زبیر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کسہ نسسبی‬
‫صلی اللہ علیہ وسلم اور ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کے بعد )سیدہ کے بڑے ب ھانجے( عبسسداللہ‬
‫بن زبیر رضی اللہ عنہما انہیں سب انسانوں سے زیادہ پیارے اور اچھے لگت سے ت ھے۔ سسسیدہ ک سے‬
‫پاس جو بھی اللہ کا رزق آتا وہ اسے )غرباء و مساکین پر( خسسرچ کسسر دیسسا کرتسسی تھیسسں۔ ایسسک‬
‫مرتبہ ابن زبیر نے )مذاقًا( کہا‪" ،‬ان کے ہاتھ کو روکنا پڑے گا۔" )جب سیدہ کسسو خسسبر ہوئی تسسو(‬
‫آپ نے فرمایا‪" ،‬کیا وہ میرا ہاتھ روکے گا؟ میں قسم کھاتی ہوں کہ اب اس سے بات نہ کروں‬
‫گی۔"‬
‫)عبداللہ ابن زبیر نے( قریش اور بالخصوص رسول اللسہ صسسلی اللسہ علیسہ وسسسلم کسے ننھیسسالی‬
‫رشتے داروں بنو زہرہ میں سے آپ کے رشتے کے ماموں عبدالرح ٰمن بن اسود اور مسور بن‬
‫مخرمہ کو ان کی خدمت میں معافی کی سفارش کے لئے بھیجا۔ انہوں نے ابن زبیر سے کہا‪،‬‬
‫"جب سیدہ ہمیں اندر آنے کی اجازت دیں تو تم دوڑ کر ان کے پردے کسے پیچ ھے گ ھس جانسسا‬
‫)اور معافی مانگ لینا۔ ان کی اس حرکت اور بزرگوں کی سفارش پر سیدہ نے انہیں معاف‬
‫کر دیا۔(‬
‫ابن زبیر نے )آپ کو خوش کرنے کے لئے( آپ کے پاس دس غلم )آزاد کرنے ک سے لئے( بھیج سے‬
‫اور آپ نے انہیں آزاد کر دیا۔ اس کے بعد آپ )اسی قسسسم ک سے کفسسارے میسسں( مسلسسسل غلم‬
‫آزاد کرتی رہیں یہاں تک کہ چالیس غلم آزاد کر دیے۔ آپ کہنے لگیں‪" ،‬کیسسا ہی اچ ھا ہوتسسا کسہ‬
‫میں قسم کھاتے ہوئے کوئی تعداد مقرر کر لیستی تسو اب تسسک اس کسام سسے فسسارغ ہو چکسی‬
‫ہوتی۔"‬

‫دیگر ام ہات المومنین‬
‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے علوہ دیگر امہات المومنین ب ھی غلم آزاد کیسسا کرتسسی‬
‫تھیں۔ احادیث اور اسماء الرجال کے ذخیرے میں سسسیدہ میمسسونہ رضسسی اللسہ عن ہا کسسی‬
‫لونڈی کا ذکر ملتا ہے جسے انہوں نسے آزاد کیسا ت ھا۔ اس کسے علوہ ان ہوں نسے مشسہور‬
‫تابعی عالم سلیمان بن یسار کو ان کے چار بھائیوں سمیت آزاد کیا تھا۔ اسی طسسرح‬
‫سیدہ ام سلمہ و ام حبیبہ رضی اللہ عنہما کے غلم آزاد کرنے کا ذکر بھی ملتا ہے۔‬
‫مهسسان‪ ،‬عسسن سسسفينة‬
‫حدثنا مسدد بن مسرهد‪ ،‬قال‪ :‬ثنا عبد الوارث‪ ،‬عسسن سسسعيد بسسن ُ‬
‫ج ْ‬
‫ّ‬
‫م رسسسول اللسسه‬
‫قال‪ :‬كنت مملوكا ً لم سلمة فقالت‪ :‬أعتقسسك وأشسسترط عليسسك أن ت ْ‬
‫خ سد ُ َ‬
‫ي مسسا فسسارقت رسسسول‬
‫صلى الّله عليه وسلم ما عشت‪ ،‬فقلت‪ :‬وإن لم تشسسترطي عل س ّ‬
‫ي‪) .‬سسسنن ابسسو داؤد‪،‬‬
‫الّله صلى الّله عليه وسلم ما عشس ُ‬
‫ت‪ ،‬فسسأعتقتني واشسسترطت علس ّ‬
‫‪167‬‬

‫کتاب العتق ‪ ،‬حديث ‪(3932‬‬
‫سفینہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں سیدہ ام سلمہ رضی اللہ عنہا کا غلم تھا۔ آپ مجھ‬
‫سے کہنے لگیں‪" ،‬میں تمہیں آزاد کرتی ہوں بشرطیکہ تم جب تک زندہ ہو رسسسول اللسہ صسسلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی خدمت کیا کرو۔" میں نے کہا‪" ،‬اگر آپ یہ شسسرط نسہ ب ھی رکھیسسں تسسب‬
‫بھی میں جب تک زندہ ہوں کبھی رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے جدائی برداشت نہ‬
‫کروں گا۔" انہوں نے مجھے آزاد کر دیا اور یہ شرط برقرار رکھی۔‬

‫دیگر صحاب ہ‬
‫احادیث میں ایسے بہت سے صحابہ کا ذکر ملتا ہے جنہوں نسے محسسض اللسہ تعسسالی کسسی‬
‫رضا کے لئے غلم آزاد کئے۔ چند مزید واقعات پیش خدمت ہیں‪:‬‬
‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا عفان حدثنا حماد بن سلمة أنبأنا أبو غالب عسسن أبسسي‬
‫أمامة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم أقبل من خيبر ومعه غلمسسان فقسسال علسسي‬
‫رضي الله عنه‪ :‬يا رسول الله أخدمنا فقال‪ :‬خذ أيهما شئت فقال‪ :‬خر لسسي قسسال‪ :‬خسسذ‬
‫هذا ول تضربه فإني قد رأيته يصلي مقبلنا من خيبر وإني قد نهيسست عسسن ضسسرب أهسسل‬
‫الصلة وأعطى أبا ذر الغلم الخر فقال‪ :‬استوص به خيرا ثم قال‪ :‬يا أبسسا ذر مسسا فعسسل‬
‫الغلم الذي أعطيتك قال‪ :‬أمرتني أن أستوص به خيرا فسسأعتقته‪) .‬مسسسند احمسسد‪ ،‬بسساب‬
‫ابو امامة باهلی(‬
‫ابو امامہ باہلی رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم جب خیبر‬
‫سے واپس آئے تو آپ کے ساتھ دو غلم تھے۔ سیدنا علی رضی اللہ عنہ کہنے لگے‪" ،‬یسسا رسسسول‬
‫اللہ! ان میں سے ایک مجھے کام کے لئے دے دیجیے۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬جو تمہیں پسند ہے‪ ،‬لسسے‬
‫لو۔" میں نے ایک کو پسند کیا تو آپ نے فرمایا‪" ،‬اسے کبھی مارنا نہیں۔ میں ن سے واپسسسی پسسر‬
‫اسے نماز پڑھتے ہوئے دیکھا ہے اور نماز پڑھنے والوں کو مارنے سے میسسں نسے تمہیسسں منسسع کیسسا‬
‫ہے۔"‬
‫آپ نے دوسرا غلم ابوذر )غفاری( رضی اللہ عنہ کو دیا اور فرمایا‪" ،‬میں تمہیں اس کے بارے‬
‫میں اچھے سلوک کی وصیت کرتا ہوں۔" کچھ عرصسے بعسسد آپ نسے پوچ ھا‪" ،‬ابسسوذر! میسسں نسے‬
‫تمہیں جو غلم دیا تھا‪ ،‬تم نے اس کا کیا کیا؟" وہ بولے‪" ،‬آپ نسے مج ھے اس کسے سسساتھ اچ ھے‬
‫سلوک کی وصیت کی تھی‪ ،‬میں نے اسے آزاد کر دیا۔"‬

‫حدثنا محمد بن عبد الله بن نمير‪ ،‬عن محمد بن بشر‪ ،‬عن إسماعيل‪ ،‬عن قيس‪ ،‬عسسن‬
‫أبي هريرة رضي الله عنه‪ :‬أنه لما أقبل يريد السلم‪ ،‬ومعه غلمسسه‪ ،‬ضسسل كسسل واحسسد‬
‫منهما من صاحبه‪ ،‬فأقبل بعد ذلك وأبو هريرة جالس مع النبي صلى الله عليه وسلم‪،‬‬
‫فقال النبي صلى الله عليه وسلم‪) :‬يا أبا هريرة‪ ،‬هذا غلمك قد أتاك(‪ .‬فقال‪ :‬أما إني‬
‫أشهدك أنه حر‪ ،‬قال‪ :‬فهو حين يقول‪ :‬يا ليلة من طولها وعنائها * على أنهسا مسن دارة‬
‫الكفر نجت‪) .‬بخاری‪ ،‬کتاب العتق‪ ،‬حديث ‪(2530‬‬
‫ابوھریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ جب انہوں نے اسلم قبول کرنسے کسا ارادہ کیسسا تسسو ان‬
‫کے ساتھ ان کا ایک غلم بھی )اسلم قبسسول کرنسے کسے ارادے سسے( چل۔ یسہ دونسسوں حضسسرات‬
‫راستے میں ایک دوسرے سے بچھڑ گئے۔ )ابوھریرہ پہلے مدینہ پہنچ گئے( اور وہ بعد میسسں پہنچسسا‬
‫تو ابوھریرہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے پاس بیٹھے ہوئے تھے۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬ابسسوھریرہ!‬
‫تمہارا غلم بھی پہنچ گیا۔" وہ کہنے لگے‪" ،‬میں آپ کو گواہ بناتا ہوں ک سہ ی سہ آج س سے آزاد ہے۔"‬
‫اس کے بعد انہوں نے شعر پڑھا‪" ،‬آج کی رات بہت لمبی لیکن بہت پیاری ہے کیسسونکہ اس نسسے‬
‫مجھے دار کفر سے نجات دی ہے۔"‬

‫َ‬
‫ك‪ ،‬ع َن ع َبد الرحمن بن أبي ع َمسرة َ ال َنصسساري ‪ :‬أ َن أ ُمس َ‬
‫مال ِ ٌ‬
‫ي‪،‬‬
‫ن ُتو ِ‬
‫تأ ْ‬
‫َ‬
‫ه أَراد َ ْ‬
‫ّ ّ ُ‬
‫ْ ْ ِ ّ ْ َ ِ ْ ِ ِ‬
‫حد ّث َِني َ‬
‫ْ َ‬
‫صس َ‬
‫ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ث ُم أ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ن‬
‫س‬
‫م‬
‫ح‬
‫ر‬
‫ال‬
‫د‬
‫س‬
‫ب‬
‫ع‬
‫ل‬
‫قسا‬
‫َ‬
‫ف‬
‫ق‪،‬‬
‫ت‬
‫ع‬
‫ت‬
‫ن‬
‫أ‬
‫ب‬
‫ت‬
‫م‬
‫ه‬
‫ت‬
‫ن‬
‫كا‬
‫د‬
‫ق‬
‫و‬
‫ت‪،‬‬
‫ك‬
‫ل‬
‫ه‬
‫ف‬
‫ح‬
‫ب‬
‫ص‬
‫ت‬
‫ن‬
‫أ‬
‫لى‬
‫إ‬
‫ك‬
‫ل‬
‫ذ‬
‫ت‬
‫ر‬
‫خ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ِ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ّ ْ ِ‬
‫ْ‬
‫ْ ِ‬
‫َ ْ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫ْ َ‬
‫ّ َ ِ‬
‫فعها أ َن أ ُ‬
‫قاسم ِ بن محمد أ َ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫فَ‬
‫َ‬
‫س‬
‫ب‬
‫د‬
‫ع‬
‫س‬
‫س‬
‫ن‬
‫إ‬
‫م‬
‫س‬
‫س‬
‫قا‬
‫َ‬
‫ل‬
‫ا‬
‫ل‬
‫سا‬
‫س‬
‫َ‬
‫ق‬
‫ف‬
‫ها‪،‬‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ق‬
‫ت‬
‫ع‬
‫َ‬
‫ن‬
‫ي‬
‫َ‬
‫ل‬
‫ل‬
‫‪:‬‬
‫ت‬
‫ل‬
‫ُ‬
‫ق‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ن ع ُب َسساد َةَ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫ْ‬
‫ٍ‬
‫ِ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫ّ‬
‫ْ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ِ‬
‫ِ ِ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫ّ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ت‪ ،‬فهَ ْ‬
‫َقا َ‬
‫ن أع ْت ِسقَ ع َن ْهَسسا‪،‬‬
‫ل ي َن ْ َ‬
‫فعَُها أ ْ‬
‫ل اللهِ صلى الله عليه وسلم ‪ :‬إ ِ ّ‬
‫ل ل َِر ُ‬
‫مي هَلك ْ‬
‫نأ ّ‬
‫سو ِ‬
‫سو ُ‬
‫قا َ‬
‫م «‪) .‬موطسسا مالسسک‪ ،‬کتسساب العتسسق‬
‫فَ َ‬
‫ل َر ُ‬
‫ل الل ّهِ صلى الله عليسسه وسسسلم ‪ » :‬ن َعَس ْ‬
‫والولء‪ ،‬حديث ‪(2261‬‬
‫‪168‬‬

‫عبدالرح ٰمن بن ابی عمسرہ النصساری بیسان کرتسے ہیسں کسہ ان کسی والسدہ غلم آزاد کرنسے کسی‬
‫وصیت کرنا چاہتی تھیں۔ اس میں کچھ تاخیر ہو گئی اور وہ وفات پا گئیسسں۔ عبسسدالرحمن ن سے‬
‫قاسم بن محمد )بن ابوبکر صسسدیق( سسے پوچ ھا‪" ،‬اگسسر میسسں ان کسسی طسسرف سسے غلم آزاد‬
‫کروں تو کیا یہ ان کے لئے فائدہ مند ہو گا؟" قاسم کہنے لگے‪" ،‬سعد بن عبادہ رضسسی الل سہ عن سہ‬
‫نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے یہی بات پوچھی تھی‪" ،‬میری والدہ فوت ہو گئی‬
‫ہیں۔ اگر میں ان کی جانب سے غلم آزاد کروں تو کیا انہیسسں اس کسا فسائدہ ہ ہو گسسا؟" آپ نسے‬
‫فرمایا تھا‪" ،‬بالکل ہو گا۔"‬

‫حدثنا عبد الله حدثني أبي حدثنا أبو نوح قراد قال أنبأنا ليث بن سسسعد عسسن مالسسك بسسن‬
‫أنس عن الزهري عن عروة عن عائشة عن النبي صلى الله عليه وسلم وعسسن بعسسض‬
‫شيوخهم أن زيادا مولى عبد الله بن عباد بن أبي ربيعة حدثهم عمن حدثه عن النسسبي‬
‫صلى الله عليه وسلم أن رجل من أصحاب رسول الله صلى الله عليه وسسسلم جلسسس‬
‫بين يديه فقسسال‪ :‬يسسا رسسسول اللسسه إن لسسي مملسسوكين يكسسذبونني ويخونسسونني ويعصسسونني‬
‫وأضربهم وأسبهم فكيف أنا منعهم فقال له رسول الله صلى الله عليه وسلم‪:‬‬
‫بحسب ما خانوك وعصوك ويكذبوك وعقابك إياهم إن كان دون ذنوبهم كان فضل لك‬
‫عليهم۔ وإن كان عقابك إياهم بقدر ذنوبهم كان كفافا ل لك ول عليك۔ وإن كان عقابك‬
‫إياهم فوق ذنوبهم اقتص لهم منك الفضل الذي بقي قبلك۔ فجعل الرجسسل يبكسسي بيسسن‬
‫يدي رسول الله صلى الله عليه وسسسلم ويهتسسف فقسسال رسسسول اللسسه صسسلى اللسسه عليسسه‬
‫وسلم‪ :‬ما له ما يقرأ كتاب الله ونضع الموازين القسط ليوم القيامة فل تظلسم نفسس‬
‫شيئا وإن كان مثقال حبة من خردل أتينسسا بهسسا وكفسسى بنسسا حاسسسبين۔ فقسسال الرجسسل‪ :‬يسسا‬
‫رسول الله ما أجد شيئا خيرا من فراق هولء يعني عبيسسده إنسسي أشسسهدك أنهسسم أحسسرار‬
‫كلهم‪) .‬مسند احمد‪ ،‬باب عائشة(‬
‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ک سے صسسحابہ‬
‫میں سے ایک صاحب آ کر آپ کے قریب بیٹھ گئے اور کہنے لگے‪" ،‬یا رسسسول اللسہ! میسسرے کچسھ‬
‫غلم ہیں جو مجھ سے جھوٹ بولتے ہیں‪ ،‬خیانت کرتے ہیں اور میری بات نہیں مانتے۔ میں نسے‬
‫انہیں مارا ہے اور برا بھل کہا ہے۔ میں انہیں کس طریقے سے اس سے بسساز رک ھوں۔" رسسسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪:‬‬
‫"اگر تم نے ان کی خیانت‪ ،‬نافرمانی اور جھوٹ کی نسبت کم سزا انہیں دی ہے تو یہ ان پسسر‬
‫تمہاری مہربانی ہے۔ اگر تم نے ان کے جرائم کے مطابق سزا دی ہے تو معاملہ برابر برابر ہے۔‬
‫نہ تو تمہاری مہربانی ہے اور نہ ہی تم پر کوئی ذمہ داری ہے۔ اگسسر تسسم ن سے ان ک سے جسسرائم کسسی‬
‫نسبت انہیں زیادہ سزا دی ہے تو پھر یاد رکھو کہ جتنی زیادتی تم نے کی ہے‪ ،‬اس کا تسسم س سے‬
‫حساب لیا جائے گا۔"‬
‫)ان صاحب پر اس بات کا اتنا اثر ہوا کہ( وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ک سے سسسامنے‬
‫زور زور سے رونے لگے۔ حضور نے فرمایا‪" ،‬کیا تم اللسہ کسسی کتسساب میسسں نہیسسں پڑھتسے کسہ ' ہم‬
‫قیامت کے دن میزان لگا دیں گے۔ کسی شخص پر کوئی ظلم نہ ہو گا۔ اگر کسسسی ن سے مسسٹی‬
‫کے ذرے کے برابر بھی )نیکی یا برائی( کی ہو گی تو ہم اس سے اس کسسا بسسدلہ دیسسں گ سے اور ہم‬
‫حساب کرنے کے لئے کافی ہیں۔' " وہ شخص یہ سن کر کہنے لگا‪" ،‬یا رسسسول اللسہ! میسسرے لئے‬
‫ان غلموں کو چھوڑنے سے بہتر کوئی بات نہیں ہے۔ میں آپ کو گواہ بناتا ہوں کہ وہ سب کسسے‬
‫سب آزاد ہیں۔"‬

‫ل ‪ :‬حدث َنا هُريم ‪ ،‬ع َ َ‬
‫صورٍ ‪َ ،‬قا َ‬
‫ن‬
‫ّ َ‬
‫سس َ‬
‫س َ‬
‫َ‬
‫ن أب ِسسي إ ِ ْ‬
‫حد ّث ََنا إ ِ ْ‬
‫َ ْ ٌ‬
‫ن َ‬
‫من ْ ُ‬
‫حاقَ ‪ ،‬ع َس ْ‬
‫َ ْ‬
‫حاقُ ب ْ ُ‬
‫ن ع َب ْسد ِ اللسهِ ب ْس ِ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ْ‬
‫قا َ‬
‫عى ‪ ،‬فَأَتاه ُ ب ِ َ‬
‫َ‬
‫ح سّر‬
‫ه ‪ ،‬فَ َ‬
‫مّر ب َِراٍع ي َْر َ‬
‫دا َ‬
‫ه‪ُ :‬‬
‫شاةٍ فَأهْ َ‬
‫ن ال ُ‬
‫دادٍ ‪ :‬أ ّ‬
‫ش ّ‬
‫ح َ‬
‫ل لس ُ‬
‫ها ل ُ‬
‫ي َ‬
‫ن ع َل ِ ّ‬
‫ن بْ َ‬
‫سي ْ َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ٌ‬
‫ٌ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫ُ‬
‫َ‬
‫َ‬
‫م‬
‫ها ع َلي ْهِ ‪ ،‬ف َ‬
‫ملوك ؟ ف َ‬
‫ملوك ‪ ،‬فَرد ّ َ‬
‫قَبلهَسسا ِ‬
‫قسسال ‪ :‬إ ِن ّهَسسا ِلسي ‪ ،‬ف ِ‬
‫تأ ْ‬
‫ه ‪ ،‬ثس ّ‬
‫من ْس ُ‬
‫م ْ‬
‫قال ‪َ :‬‬
‫م ْ‬
‫م َ‬
‫أن ْ َ‬
‫جع َ َ‬
‫شت ََراه ُ َوا ْ‬
‫ا ْ‬
‫ه‪) .‬ابن ابی شيبة‪ ،‬حديث ‪(23642‬‬
‫م ‪ ،‬وَأ َع ْت َ َ‬
‫ه وَ َ‬
‫م لَ ُ‬
‫ل ال ْغَن َ َ‬
‫ق ُ‬
‫شت ََرى ال ْغَن َ َ‬
‫سیدنا امام حسین بن علی رضی اللہ عنہما ایک چرواہے کے پاس سے گسسزرے جسسو ک سہ بھیڑیسسں‬
‫چرا رہا تھا۔ اس نے ایک بھیڑ ان کی خدمت میں تحفتا ً پیش کی۔ آپ نے پوچھا‪" ،‬تسسم آزاد ہو‬
‫یا غلم ہو؟" اس نے کہا‪" ،‬غلم ہوں۔" آپ نے بھیڑ اسے واپس کر دی۔ اس نے کہا‪" ،‬ی سہ میسسری‬
‫اپنی ہے۔" آپ نے تب اس کا تحفہ قبول فرما لیا۔ اس کے بعد آپ نے اس غلم کو پورے گلسسے‬
‫سمیت خرید لیا اور اسے آزاد کر کے تمام بھیڑ بکریاں اسے تحفتا ً دے دیں۔‬
‫‪169‬‬

‫حدثنا علي بن حمشاذ ثنا عبد الله بن أحمد بن حنبل ثنا أحمسد بسن إبراهيسم السدورقي‬
‫حدثني أبو نعيم الفضل بن دكين ثنا زهير عن ليث عن مجاهد عن علي بن عبسسد اللسسه‬
‫بن عباس قال أعتق العباس عنسسد مسسوته سسسبعين مملوكسسا۔ )مسسستدرک حسساکم‪ ،‬حسسديث‬
‫‪(5402‬‬
‫سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ ان کے والد عباس نے اپنسسی وفسسات‬
‫کے وقت ستر غلموں کو آزاد کیا۔‬

‫یہ صرف چند واقعات ہیں۔ غلموں کو آزاد کرنے کی مثالوں سے اسماء الرجال کسسی‬
‫کتب بھری ہوئی ہیں۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ اسلم نے غلموں کی آزادی کو ایک‬
‫سماجی ادارے )‪ (Social Institution‬کی شکل دے دی تھی۔ اس بات کو تمام انصاف‬
‫پسند مغربی مورخین نے تسلیم کیا ہے۔ یہاں ہم بطور مثال برطانیہ کے لیجنسسڈ مسسورخ‬
‫ایڈورڈ گبن کے کچھ اقتباسات پیش کر رہے ہیں‪:‬‬
‫‪A familiar story is related of the benevolence of one of the sons of Ali. In serving at table,‬‬
‫‪a slave had inadvertently dropped a dish of scalding broth on his master: the heedless‬‬
‫‪wretch fell prostrate, to deprecate his punishment, and repeated a verse of the Koran:‬‬
‫‪"Paradise is for those who command their anger: " - "I am not angry: " - "and for those‬‬
‫‪who pardon offences: " - "I pardon your offence: " - "and for those who return good for‬‬
‫"‪evil: " - "I give you your liberty and four hundred pieces of silver.‬‬
‫) ‪(Edward Gibbon, The History of Decline & Fall of Roman Empire, http://www.ccel.org‬‬

‫علی کے بیٹوں میں سے ایک بیٹے )حسن( کے حسن سلوک کی ایک کہانی بیان کی گئی ہے۔‬
‫کھانا پیش کرتے ہوئے ایک غلم سے اچانک پلیٹ گر گئی جس سے آقا پر ابلتا ہوا سسسالن گسسر‬
‫گیا۔ لپرواہ غلم نے اپنی سزا کو کم کروانے کے لئے نہایت عاجزی سے قسرآن کسی ایسک آیست‬
‫تلوت کی‪" ،‬جنت ان کے لئے ہے جو اپنے غصے پر قابو رکھتے ہیں۔" )حسسسن نسے جسسواب دیسسا‪(،‬‬
‫"مجھے غصہ نہیں آیا۔" )غلم کہنے لگا‪" (،‬اور وہ جو لوگوں کے قصور معسساف کسسر دیتسے ہیسسں۔"‬
‫)حسن نے فرمایا‪" (،‬میں نے تمہارا قصور معاف کیسسا۔" )غلم نسے آیسست کسسا بسساقی حصسہ تلوت‬
‫کیا‪" (،‬اور وہ جو برائی کے بدلے بھلئی کرتے ہیں۔" )حسن کہنے لگے‪" (،‬میں تمہیں آزاد کرتسسا‬
‫ہوں اور چار سو درہم دیتا ہوں۔"‬

‫بعد ک ے ادوار میں غلموں کی آزادی کی تحریک ک ے‬
‫اثرات‬
‫غلموں کی آزادی کی تحریک کے اثرات اس دور س سے ل سے کسسر آج تسسک ہر دور میسسں‬
‫برقرار رہے ہیں۔ غلموں کی آزادی مسلمانوں کے ہاں مکمسسل اتفسساق رائے کسے سساتھ‬
‫ایک نیکی رہی ہے۔ مسلمانوں کے نیک تو کیا برے لسسوگ ب ھی غلمسسوں کسسو آزاد کرتسے‬
‫رہے ہیں۔ ابن جوزی المنتظم میں بیان کرتے ہیں کہ بنو امیہ کے مشہور ظسسالم گسسورنر‬
‫حجاج بن یوسف نے بھی مرتے وقت اپنے تمام غلموں کو آزادی دے دی تھی۔‬
‫کے ایس لل‪ ،‬جنہوں نے ہندوستان میں مسلمانوں کے غلمی کے نظام کا ن ہایت‬
‫ہی متعصبانہ اور یکطرفہ تجزیسہ کرتسے ہہہوئے بہہہت سسے اسسسلمی قسسوانین اور تسساریخی‬
‫حقائق کو مسخ کر کے پیش کیا ہے‪ ،‬بیان کرتے ہیں‪:‬‬
‫‪Manumission was widely practised in India for various reasons and causes. For instance,‬‬
‫‪many are the blessings to those who fast during Ramzan, but if neglected intentionally the‬‬
‫‪offender must expiate his guilt by the manumission of one male slave (ghulam) for every‬‬
‫‪day that he broke the fast. Or, when the emperor Shahjahan was ill, his daughter liberated‬‬
‫‪several slaves, made them walk round her father, and then sent them away to carry his‬‬
‫)‪infirmities with them. (K. S. Lal, Muslim Slave System, Chapter XI‬‬
‫مختلف وجوہات اور اسباب کی بنیاد پر غلموں کی آزادی کسسا انسڈیا میسسں عسسام معمسسول ت ھا۔‬
‫‪170‬‬

‫مثال کے طور پر‪ ،‬جو شخص رمضان میں روزے رکھے تو اس کے لئے بہت سے انعام ہوں گے‬
‫لیکن اگر کوئی جان بوجھ کر روزہ توڑ دے تو ہر روزے کے بدلے اسے ایسسک غلم آزاد کرنسسا ہو‬
‫گا۔ اسی طرح جب شاہجہان بیمار ہوا تو اس کسسی بیسسٹی ن سے متعسسدد غلم آزاد کئے اور انہیسسں‬
‫اپنے باپ کے گرد پھیرے لینے کا حکم دیا تاکہ وہ ا