‫درس قرآن ک ے اصول وآداب‬

‫محترم عبدالوحید پشاوری‬
‫عوام الناس میں خععدمت دیععن کععا ب ہترین اور مععؤثر ذریع ع ہ‬
‫”درس قرآن“ ہے اور اس ک ے مؤثر ہون ے کی وج ہ ی ع ہ ہے ک ع ہ‬
‫خود الله تعال ٰی ن ے جب لوگوں کو دین کی طرف بلنا چا ہا‬
‫تو قرآن کو ذریع ہ بنایا ۔ قرآن پاک ایسععی کتععاب ہے جععو بل‬
‫ترجم ہ وتفسیر ب ھی زندگی کا رخ موڑن ے ک ے لی ے کافی ہے۔‬
‫دیععن پ ھیلن ع ے وال ع ے اداروں کععی موجععود ہ صععورت کععا قیععام‬
‫ماضی قریب میں ہوا ‪ ،‬اس س ے پ ہل ے ”درس قرآن“ ہی کعو‬
‫عام طور پر اشاعت دین کا ذریع ہ بنایععا جاتععا ت ھا ۔ اب کچ ع ھ‬
‫عرص ہ س ے درس قرآن کی محفلوں کی رونق غععائب ہوتی‬
‫جار ہی ہے اور قرآن کا صحیح ف ہم رک ھن ے وال ے ائم ہ مسععاجد‬
‫اور علماء دوسر ے علمی مشععاغل میععں لگ ع ے تععو یع ہ میععدان‬
‫خالی ر ہ گیا ۔ میدان کو خالی پاکر دو طبقع ے بعر سعر عععام‬
‫آئ ے‪ ،‬ایک و ہ طبق ہ جس ن ے ”درس قرآن برائ ے درس قرآن“‬
‫کععو اپنااوڑ ھنععا بچ ھونععا بنایععا اور اشععاعت دیععن اور اصععلح‬
‫معاشر ہ کی بجائ ے امت کو افتراق وانتشار س ے دو چار کیا‬
‫اور کوئی خاطرخوا ہ ثمععر‪ ،‬نععتیج ہ اور آؤٹ پععٹ )‪(Out Put‬‬
‫سامن ے ن ہیں آیا ۔‬
‫دوسرا و ہ طبق ہ ہے جععو خععالص انگریععزی مععاحول میععں پل ع ے‬
‫بڑ ھے ‪ ،‬جن کو کب ھی عربعی زبعان وادب سع ے واسعط ہ ن ہیععں‬
‫پڑا‪ ،‬ان ہوں ن ے اردو تفاسیر س ے ترجم ہ دیک ھ کععر ف ہم قععرآن‬
‫ک ے نام س ے عععوام النععاس میععں اپنععا مشععن ونظریع ہ پ ھیلنععا‬
‫شروع کر دیا ۔ اس مقصد کیعملی صورت ک ے لی ع ے و ہ کرای ع ہ‬
‫ک ے مکانات ل ے ل ے کر ‪ ،‬ان میں لؤ ڈ اسپیکر کرسیاں وغیععر ہ‬
‫م ہیا کرکع ے اور لوگععوں کععو جمععع کرنع ے کع ے لیع ے اشععت ہارات‬
‫چ ھپوا کر لک ھوں روپ ے خرچ کر لیت ے ہیں ۔ لیکععن اس وقععت‬
‫ب ہت افسوس ہوتا ہے ک ہ ہمار ے علمععاء اور ائمع ہ مسععاجد کع ے‬
‫پاس ہر س ہولت موجود ہے‪ ،‬جگ ہ موجود ہے‪ ،‬منععبر ومحععراب‬

‫موجود ہیں‪ ،‬لؤ ڈ اسپیکر کا بندوبست ہے ‪ ،‬زمین پر کععارپٹ‬
‫لگا ہوا ہے ‪ ،‬لوگ دن میں پانچ مرتب ع ہ خععود بخععود حاضععر ہو‬
‫جععات ے ہیععں ‪ ،‬ان کععو بلنع ے کع ے لیع ے اعلن ن ہیععں کرنععا پڑتععا‪،‬‬
‫اشت ہارات ن ہیں چ ھپوان ے پڑت ے ‪ ،‬سب کچ ھ بدرج ہ اتععم موجععود‬
‫ہیں‪ ،‬لیکن اگر ن ہیں ہے تو امام وخطیب صاحب ک ے دل میں‬
‫درد ن ہیں ہے ‪ ،‬کڑ ھن ن ہیں ہے‪ ،‬جو اس کو اس بات پر مجبور‬
‫کر ے ک ہ لوگوں کی اصلح کی فکععر کععر ے‪ ،‬معاشععر ہ بععدترین‬
‫برائیوں کا شکار ہے‪ ،‬ی ہ بحیثیت لوگوں ک ے امام ک ے اپنا کچ ھ‬
‫کردار ادا کر ے اور لوگوں کو اس فتن ہ وفساد ک ے دور میععں‬
‫صراط مستقیم پر چلئ ے ‪ ،‬جو معاشر ہ ک ے لوگوں کا بنیادی‬
‫حق ہے او راگر کوئی نام ن ہاد درس ) قععرآن( شععروع ب ھی‬
‫کر ے تو ذم ے داری سمج ھن ے ک ے بجائ ے‪ ،‬بوج ھ سمج ھ کر جان‬
‫چ ھڑاتا ہے‪ ،‬ظععا ہر ہے ایسععی حععالت میععں درس قععرآن کععی‬
‫محفلیں کب بارونق ہو سکتی ہیععں اور جدیععد مسععائل سع ے‬
‫دو چار انسانوں ک ے مسائل کب حل ہو سععکت ے ہیععں اور ان‬
‫کی پیاس کب بج ھ سکتی ہے۔‬
‫اس لی ے ائم ہ مسععاجد اور علمععائ ے کععرام کع ے سععامن ے دسععت‬
‫بست ہ عاجزان ہ درخواسعت کرتع ے ہیعں کع ہ و ہ درس قعرآن کعو‬
‫اصععول اور آداب س ع ے سععر انجععام د ے کععر اصععلح معاشععر ہ‪،‬‬
‫اشاعت دین او رمسائل حاضر ہ ک ے حل کا ذریع ہ بنائیں ذیل‬
‫میں درس قرآن سع ے متعلععق چنععد اصععول وآداب ذکععر کیع ے‬
‫جات ے ہیں ۔‬
‫درس قرآن دین ے وال ے کو اول اپنععی نیععت درسععت‬
‫•‬
‫کرنی چا ہی ے ک ہ اس ک ے دل میں ی ہ درد ہو ‪ ،‬کڑ ھن ہو‪ ،‬ب ے‬
‫چینی ہو ک ہ میں ن ے لوگوں کو کچ ھ دینععا ہے او ران کععو‬
‫بر ے انجام س ے بچانا ہے ۔ اس مقصد ک ے لی ے اس کا دل‬
‫ایسا ب ے چین ہو کع ہ ﴿لعلععک بععاخع نفسععک ان ل یکونععوا‬
‫مؤمنین ﴾ والی حالت ہو ۔‬
‫درس قرآن کو ایک ا ہم کام سمج ھ کر اس ک ے لی ے‬
‫•‬
‫مستقل وقت نکالنا ہوتععا ہے ۔ اگععر دل میععں کععام کععی‬
‫ا ہمیت ہو تو وقت خود بخود نکل آئ ے گا ۔‬

‫درس دینع ے میععں پابنععدی کرنععا ب ہت ضععروری ہے‪،‬‬
‫•‬
‫سامن ے بیٹ ھن ے والوں کی تعداد پر نظر ن ہ ہو ‪ ،‬کععام کععی‬
‫ہو ۔‬
‫ا ہمیعععععععععععععت پعععععععععععععر نظعععععععععععععر‬
‫* …درس قرآن کا مقصد صرف اور صرف لوگوں کععی‬
‫خیر خععوا ہی ہونی چععا ہی ے‪ ،‬دل میععں کسععی سع ے کسععی‬
‫قسم کا کوئی للچ اور غرض پوشععید ہ نع ہ ہو ۔ ورنع ہ یع ہ‬
‫بات حق بات ک ے پ ہنچان ے میں رکاوٹ بن ے گی ۔‬
‫درس میععں بیٹ ھن ع ے وال ع ے لوگععوں کععی عقیععدت او‬
‫•‬
‫راعتماد حاصل کیا جائ ے ‪ ،‬اس ک ے لیع ے ضععروری ہے کع ہ‬
‫دل میں خالص ان کی صلح کی فکر ہو ‪.‬‬
‫مستقل سامعین ک ے لیع ے درس شععروع سع ے رک ھا‬
‫•‬
‫جائ ے اور غیر مستقل سامعین ک ے لی ے منتخبععات رک ھے‬
‫جائ ے اور کسی ایک موضوع س ع ے متعلععق سععاری آیععات‬
‫بیان کی جائیں اور مرکزی موضععوع کععو مععدنظر رک ھا‬
‫جائ ے۔‬
‫زبان وبیععان میععں انت ہائی سععادگی سع ے کععام لیععا‬
‫•‬
‫جائ ے ‪،‬ثقیل اورمشکل الفاظ ک ے استعمال س ے اجتناب‬
‫اور گریز کیا جائ ے‪ ،‬خععالص آسععان زبععان اسععتعمال کععی‬
‫جائ ے‪ ،‬لیکن عامیان ہ پن س ے بچاجائ ے۔‬
‫اردو زبععان میععں عربععی اور فارسععی ک ع ے الفععاظ‬
‫•‬
‫بکثرت استعمال ہوئ ے ہیں‪ ،‬لیکععن آج کععل فارسععی کععی‬
‫جگ ع ہ انگریععزی ن ع ے ل ع ے لععی ہے ۔ اگععر انگریععزی الفععاظ‬
‫استعمال کرن ے ہوں تو اس ک ے لی ے ی ہ بععات ضععروری ہے‬
‫ک ہ استعمال ہون ے وال ے الفععاظ ک ع ے معنععی ومف ہوم اور‬
‫پععس منظععر سعع ے مکمععل واقفیععت ہو ‪ ،‬ورنعع ہ ہر گععز‬
‫استعمال ن ہ کر ے۔‬
‫کسی علمی بات کو سامع تععک پ ہنچععان ے ک ع ے لی ع ے‬
‫•‬
‫آسان س ے آسان الفاظ کا انتخاب کععر ے تععاک ہ سععامع کععا‬
‫ذ ہن اس کو قبول کرن ے پر جلد آماد ہ ہو ۔‬
‫قرآنععی آیععات کععو ان ک ع ے شععان نععزول ک ع ے سععات ھ‬
‫•‬
‫محدود ن ہ کیا جائ ے ۔ قرآن پاک زند ہ وجاوید کتععاب ہے ‪،‬‬
‫ہر زمان ہ ک ے لی ے یکساں طور پر ب ھیجا گیععا ہہہے ۔ آج کععل‬
‫ہوتا ی ہ ہے ک ہ آیات کو ان ک ے شان نزول ک ے سععات ھ بانععد ھ‬
‫دیا جاتا ہے‪ ،‬جن کععی وجع ہ س ع ے موجععود ہ زمععان ہ اور بعععد‬

‫میں رونما ہون ے وال ے واقعات ک ے سات ھ ان کععی تطععبیق‬
‫کا کوئی سوچ ب ھی ن ہیں سکتا اور لشعععوری طععور پععر‬
‫سامعین کا ذ ہن ی ہ بنتا جاتا ہے ک ہ الله ن ے عرب ک ے ایععک‬
‫معاشر ے پر صرف تبصر ہ کیا ہے‪ ،‬اس سع ے آگع ے ان کع ے‬
‫ذ ھنوں میں کیا بات آسععکتی ہے‪،‬جععب خععود درس دین ع ے‬
‫وال ے ک ے ذ ہن میں کچ ھ ن ہیں ہو ۔‬
‫عام طور پر زیر درس آیات کا ماقبععل آیعات سع ے‬
‫•‬
‫ربط بیان کیا جاتا ہے‪ ،‬پ ھر ربععط کب ھی ظععا ہر ہوتععا ہے‬
‫کب ھی خفی‪ ،‬کب ھی ضعیف ہوتا ہے کب ھی قوی‪ ،‬ی ہ علمی‬
‫بحععثیں ہیععں‪ ،‬ان کععا تعلععق علمععاء س ع ے ہے ‪ ،‬عععوام ک ع ے‬
‫سامن ے ان بحثوں ک ے بیان کرن ع ے کععی چنععداں ضععرورت‬
‫ن ہیں ۔‬
‫قرآنی آیات عصری تطععبیق کع ے سععات ھ پیععش کععی‬
‫•‬
‫جائیں‪ ،‬مثل ً اصحاب بدر ک ے بار ے میں نازل ہون ے والععی‬
‫آیات کا ہماری زندگیوں س ے کیا تعلععق ہے اور موجععود ہ‬
‫زمان ہ ک ے لی ے ان س ے ہمیں کیا ر ہنمائی ملتی ہے۔‬
‫آیععات کععی عصععری تطععبیق پععر قععادر نعع ہ ہونععا او‬
‫•‬
‫رموجود ہ حالت پر آیات قرآنی کی روشنی میں تبصر ہ‬
‫ن ہ کر پانا‪،‬عقل ک ے ناقص ہون ے کی علمت ہے ۔‬
‫آیات کی عصری تطبیق ک ے لیع ے خععارجی مطععالع ہ‬
‫•‬
‫کرنا ب ہت ضروری ہے ۔ معیاری مواد‪ ،‬معتبر جرائدو اور‬
‫رسائل اور مستند محققین او رمصععنفین کععی کتععابیں‬
‫زیر مطالع ہ ہونی چا ہئیں ۔‬
‫درس دین ے وال ے کو اپ ڈیٹ ر ہنا چععا ہی ے۔ بلاسععتثنا‬
‫•‬
‫کعع ے ہر کتععاب کععا مطععالع ہ کرنععا چععا ہی ے اور مختلععف‬
‫موضاعات کو زیرفکر رک ھنا چا ہی ے۔‬
‫دینععی علععوم ک ع ے سععات ھ عصععری علععوم میععں ب ھی‬
‫•‬
‫م ہارت ہو ۔ سععامعین کععو بععوریت س ع ے بچععان ے ک ع ے لی ع ے‬
‫سیرت وتاریععخ اور ” سععائنس وقععرآن“ پععر لک ھی گئی‬
‫کتابیں مطالع ہ میں رک ھنا ضروری ہے۔‬
‫درس ک ے لی ے جتنا مطععالع ہ کیععا ہے سععب کععو بیععک‬
‫•‬
‫وقت سنانا ٹ ھیک ن ہیں ہے‪ ،‬بلک ہ موقععع کععا انتظععار کرنععا‬
‫چا ہی ے۔‬

‫درس ک ے بعد سوالت کععا موقععع دینععا چععا ہی ے‪ ،‬اگععر‬
‫•‬
‫اپن ے اوپعر اعتمععاد نع ہ ہو تعو شععروع میعں یع ہ وقفع ہ کععم‬
‫رک ھاجائ ے اور سامعین ک ے سا من ے ی ہ وضاحت کی جائ ے‬
‫ک ہ سوالت کا ی ہ وقف ہ آ ہست ہ آ ہست ہ بڑ ھائیں گ ے۔‬
‫یععومی ہ درس ک ع ے لی ع ے تیععن گنازیععاد ہ مطععالع ہ کرنععا‬
‫•‬
‫چا ہی ے ‪ ،‬مطالع ہ کا ایک ثلث بیان کرن ے ک ے لی ے ‪ ،‬دوسععرا‬
‫ثلث سوالت ک ے جوابات دین ع ے ک ع ے لی ع ے اور تیسععرا اور‬
‫آخری ثلث متوقع سوالت کی نیت س ے کرنا چا ہی ے۔‬
‫عععام طععور پععر سععامعین کعع ے ذ ہنععوں پععر مختلععف‬
‫•‬
‫نظریات سوار ہوت ے ہیں ‪ ،‬کچ ھ باتیں ان ہوں ن ے می ڈیا س ے‬
‫سنی ہوتی ہیں ‪ ،‬کچ ھ باتیں گمععرا ہ اور بععدعتی لوگععوں‬
‫س ے سنی ہوتی ہیععں او رکچع ھ بععاتیں درس میععں سععنی‬
‫ہیں تو جو بععاتیں ی ہ ہاں درس میععں سععنت ے ہیععں ان میععں‬
‫اتنی طاقت ہونی چا ہی ے جعو ان کع ے ذ ہنععوں سع ے بععاقی‬
‫سار ے نظریات مٹا سک ے اور ی ہ مقصد اس وقت حاصل‬
‫ہوگا جب درس دین ے وال ے کی تیاری پ ہلع ے سع ے اتععم اور‬
‫اکمل ہو ۔‬
‫متعلق ہ کتابوں ک ے علو ہ جدیدکتابوں کععا اپنععا ایععک‬
‫•‬
‫منتخب مطالع ہ ب ھی ہونا چا ہی ے او ر اس س ع ے قبععل اس‬
‫پر ایک نظر ڈال لی جائ ے ہو سکتا ہے اس میععں کسععی‬
‫سوال کا جواب نظر س ے گزر جائ ے۔‬
‫ہر مرتبعع ہ درس دینعع ے سعع ے پ ہلعع ے او ربعععد میععں‬
‫•‬
‫سععامعین ک ع ے انععدر اعمععال اور عقععائد ک ع ے لحععاظ س ع ے‬
‫تبدیلی آنی چا ہی ے۔‬
‫سععامعین کععی دلچسععپی بڑ ھان ے کعع ے لیعع ے سععار ے‬
‫•‬
‫اوقات مشغول رک ھے جععائیں ‪ ،‬روزان ع ہ درس دین ع ے ک ع ے‬
‫علو ہ ہفت ہ وار ‪ ،‬ما ہان ہ اور سالن ہ اجتماعات منعقد کیعع ے‬
‫جائیں ۔‬
‫ہر عمر کع ے افععراد کع ے لیع ے الععگ الععگ اجتماعععات‬
‫•‬
‫منعقععد کی ع ے جععائیں ۔ مثل ً نوجوانععوں ک ع ے لی ع ے علیحععد ہ‪،‬‬
‫بوڑ ھوں کع ے لیع ے علیحععد ہ‪ ،‬بچععوں کع ے لیع ے عل ٰیحععد ہ اور‬
‫خواتین ک ے لی ے عل ٰیحد ہ پروگرام رک ھے جائیں ۔‬

‫بنیادی طور پر ہمارا فرض منصبی ی ہ ہونععا چععا ہی ے‬
‫•‬
‫ک ہ لوگوں کو ہر حال میں باطل نظریات س ے بچانععا ہے‬
‫اور ان کو حق اور ا ہل حق ک ے سات ھ وابست ہ کرنا ہے۔‬
‫عموما ً وسائل کی کمی کععا رونععا رویععا جاتععا ہے ‪،‬‬
‫•‬
‫لیکن اگر دل میں تڑپ ہو ‪ ،‬درد ہو ‪ ،‬کڑ ھن ہو ‪ ،‬راتععوں‬
‫کو الله س ے مانگنا آتا ہو تععو پ ھر مقاصععد وسععائل خععود‬
‫پیدا کرت ے ہیں اور عزائم راست ے خود ڈھون ڈت ے ہیں ۔‬
‫مندرج ہ بال اصول وآداب بروئ ے کععار لت ع ے ہوئ ے‪ ،‬اگععر درس‬
‫قرآن دیا جائ ے تو ب ہت ہی کار آمد ثابت ہوتععا ہے‪ ،‬اگرچ ع ہ ی ع ہ‬
‫ت ھوڑا پر مشقت کام ہے‪ ،‬لیکن اس ک ے صل ہ میں جوتسععخیر‬
‫حاصل ہوگی اس پر پوری دنیععا کععو قربععان کرن ع ے کععو جععی‬
‫چا ہے گا‪ ،‬دلوں ک ے لگام ہات ھ میں آجائیں گ ے ‪ ،‬پ ھر اس بععات‬
‫کا امکان سر ے س ے ختم ہو جائ ے گا ک ہ کوئی شععخص حلق ہٴ‬
‫درس س ے نکل کر غیروں ک ے پعاس چل جعائ ے ‪ ،‬اللعه تععال ٰی‬
‫ہم سب کا حامی وناصر ہو ۔‬

Sign up to vote on this title
UsefulNot useful