You are on page 1of 154

‫بسم ال ّٰلہ الرحمن الرحیم‬

‫حق ق‬
‫ع‬
‫لم‬
‫م‬
‫مولانا اوکاڑوی اکاد ی (العا ی ) اوڑ سواد ا ظم اہل س ّٰنت ی ی کی اپیل پر‬
‫ہر سال ماہ ڑحت کے ننسرے حمعہ المیاڑک کو‬
‫حط ع‬
‫لم‬
‫ظ‬
‫ک‬
‫س‬
‫عا ی بوم یت ا م نا یان‬

‫میانا جانا ہے ۔ ملک و نیرون ملک اہل س ّٰنت و حماعت کی تمام مساجد منن اتمہ و حطیاء کرام ‪،‬‬
‫م‬
‫ح‬
‫م‬
‫س‬
‫ص‬
‫ُ‬
‫س‬
‫حطیات حمعہ منن مجدد مسلک اہل س ّٰنت ‪ ،‬ن ملک و ملت ‪ ،‬عا ق ڑسول (ﷺ) ‪ ،‬حت جابہ‬
‫م‬
‫ل حط ع‬
‫ل ع قی م مح سق‬
‫ظ‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ک‬
‫ح‬
‫س‬
‫ض‬
‫ی‬
‫و ال پیول ‪ ،‬وت او یاء‪ ،‬یت ا م نا یان رت ا جاج لامہ لہ ولانا مد ع اوکاڑوی‬
‫م‬
‫ُق ّٰدس س ّٰرہ الیاڑی وڑقع ال ّٰلہ دڑحتہ کو خراج عقیدت و حیت ننش کر تے ہنن اوڑ ابصال بوات کے‬
‫ع‬
‫ع ک مح‬
‫س‬
‫م‬
‫ظ‬
‫لئے قاتحہ خوانی کر تے ہنن ۔ ان کا بہ مل اہل س ّٰنت و حما ت ے ن و مدوج سے ا ہاڑ‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫حیت و عقیدت ت ی ہے اوڑ مسلک خق کی ناپید ت ی ۔‬
‫ھ‬
‫ان ساء ال ّٰلہ بعالی حست سابق اس سال ت ی ماہ ڑحت کی ننسری حمعرات و حمعہ کو جامع مسجد‬
‫ل‬
‫ُ‬
‫گل ڑاڑ جنیت (ﷺ) ‪ ،‬گلسیان اوکاڑوی ( سو جر ناڑاڑ ) کراحی ‪ ،‬منن سالابہ دو ڑوڑہ مرکری عرس‬

‫میاڑک کی بقرپیات ہون گی ۔ ات سے گراڑس ہے کہ اہل س ّٰنت کے مراکر اوڑ مساجد و مداڑس منن‬
‫ع‬
‫حضرت حطیت ا ظم ناکسیان علتہ الرحمہ والرضوان کو ابصال بوات کے لئے‬
‫ع‬
‫حمعہ ‪ 80‬خون ‪2802‬ء کو بوم حطیت ا ظم‬
‫ّٰ‬
‫) میا تے کا اہیمام کر کے عیدال ّٰلہ ماخوڑ ہون ۔ ( خراکم اللہ بعالی‬
‫احیاڑات و خراند کو اس سلسلے منن میعقدہ بقرپیات کی بقصیلات پرا تے اساعت ضروڑ (‬
‫ھ‬
‫) ت حواننن‬

‫ڑابطہ ‪2352 5223 20 8802 :‬‬
‫مونانل ‪2280205-8582 :‬‬
‫بوجہ فرماننن‬
‫م‬
‫ع‬
‫مجدد مسلک اہل س ّٰنت ‪ ،‬حطیت ا ظم ناکسیان ‪،‬عاسق ڑسول (ﷺ) ‪ ،‬حضرت علامہ مو لانا حمد‬

‫ق‬
‫س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے ‪ ۱۲‬ڑحت ‪۲۱۴۱‬ھ تمطابق ‪ ۱۱‬اپرنل ‪۲۸۹۱‬ء کو اس داڑ قانی سے ُجلد‬

‫پرپن کی طرف ڑجلت فرمانی ۔ ان کے دوسرے سالابہ عرس سرانا قدس کے موقع پر انک منسوط‬
‫ص‬
‫گ‬
‫ح‬
‫م‬
‫م‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ئ‬
‫ط‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ح‬
‫س‬
‫ک‬
‫اوڑ یم یات ’’ یت نا یان ( ا پ ے معاضر ن کی بظر ن ) ‘‘سابع کی یی ۔ ش ن‬
‫عماندپن جکومت ‪ ،‬علما و مسا تخ ‪ ،‬ساعرون ‪ ،‬ادپیون اوڑ عقیدت میدون کے مساہدات و نأپرات‬
‫سامل تھے ۔‬
‫ع‬
‫حضرت قیلہ عالم حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کے خوا لے سے ات نک حمع ہو تے والی تجرپرون پر‬
‫م‬
‫مس‬
‫ع‬
‫یمل انک حموعہ اساعت کے لئے پیاڑ ہے ۔ ات سے گراڑس ہے کہ حضرت حطیت ا ظم ناکسیان‬
‫ل‬
‫علتہ الرحمہ والرضوان کی دپیی و م ی جدمات ‪ُ ،‬ان کی تے میال حطاپت ‪ ،‬مسلک خق کے لئے تجدندی‬
‫ع‬
‫ع‬
‫و ابقلانی کاڑ گراڑی ‪ ،‬ملک و قوم کی ب میر و پرقی و دنگر صدقات جاڑبہ ‪ ،‬سیاسی و سماحی مسا ی ‪،‬‬
‫تحقیق و بصنیف اوڑ دات و ضقات کے ناڑے منن ا پئے مساہدات و نأپرات ( نیر و بظم ) منن‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ہ ھ‬
‫نلاناجیر منن ت حوادپن ۔ ات کے ناس ان کی کونی بقرپر و تجرپر نا بصوپر حقوط ہو بو منن اس کی‬
‫بقل ضروڑ فراہم کرپن۔ ہم اس کے لئے ات کے سکر گراڑ ہون گے ۔‬
‫لم‬
‫م‬
‫) مولانا اوکاڑوی ؒ اکاد ی ( العا ی‬
‫ھ م‬
‫‪۳۵‬۔نی ‪ ،‬سید ی سلم سوساپیی ‪ ،‬کراحی ۔ ‪04488‬‬
‫‪53-B, S.M.C.H.Society, Karachi - 74400‬‬
‫قون ‪02 +)820(0525 5432 , 5 3545 432 :‬‬

‫انک گراڑس‬
‫م‬
‫اہل اتمان ‪ ،‬اہل محیت سے گراڑس ہے کہ وہ سالابہ عرس سربف کی حقل منن احیماعی َطوڑ رپ‬
‫ابصال بوات‬
‫ہدبہ کر تے منن )سمولیت جاہنن بو فران کرتم ‪ُ ،‬دڑدو سربف ‪ ،‬کلمہ طنتہ اوڑ دنگر اوڑاد و وطابف (‬
‫ص‬
‫عط م‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ھ‬
‫ق‬
‫ح‬
‫ص‬
‫ت‬
‫س‬
‫ن‬
‫م‬
‫ی‬
‫ب‬
‫ک‬
‫پرھ کر اس کی یخ ل تجرپری طوڑ پر نن حوا نن ناکہ دپن و ملت ے یم ن کو ڑنادہ‬
‫سے ڑنادہ پیکیون کا ابصال بوات کیا جا تے ۔‬

‫دپیی مداڑس منن اگر عرس کے انام منن فران خوانی کا حصوصی اہیمام کیا جا تے بو بقنیا بہ تہاپت‬
‫مسیحس ہ خ ک ل ّٰ‬
‫میاڑک و ن وگا ۔ را م ا لہ بعالی‬

‫دڑس فران کرتم‬
‫ل‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ط‬
‫ح‬
‫ع‬
‫ح‬
‫س‬
‫ض‬
‫مل‬
‫مجاہد اہل سنت ‪ ،‬عا ی ع ا لام ‪ ،‬یت ت رت لامہ و ت بوڑانی اوکاڑوی مدطلہ‬

‫ُ‬
‫العالی ہر حمعہ کو تماڑ سے قیل دوتہر انک تحے جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت (ﷺ) ‪ ،‬گلسیان اوکاڑوی ‪،‬‬

‫کراحی منن دڑس فران کرتم پیان فرما تے ہنن اوڑ ہر ابواڑ کو تماڑ عساء کے قوڑا بعد دڑس بصوف‬

‫پیان کر تے ہنن اوڑ حیم عوپتہ کا وڑد ہونا ہے ‪ ،‬علاوہ اڑپن ہر ماہ گیاڑہوپن ست کو گیاڑہوپن سربف‬
‫کا ُڑوجانی احیماع ہونا ہے ۔‬

‫) خواننن کے لئے ناپردہ بشست کا اہیمام ہونا ہے (‬

‫اطلاع‬
‫گ ک‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ع‬
‫ف‬
‫ن‬
‫رستہ ھ رس سے لامہ و ت بوڑانی اوکاڑوی ے پیان و تے وا ے دڑس ران کی ڑبکاڑد گ کی‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ُ‬
‫کس‬
‫جاڑ ی ہے ‪ ،‬وہ تمام ن ینن مکنتہ گل ڑاڑ جنیت (ﷺ) ‪ ،‬گلسیان اوکاڑوی (سو جر ناڑاڑ) کراحی منن‬
‫دست نات ہنن ۔‬

‫بسم ال ّٰلہ الرحمن الرحیم‬
‫ّٰ ل‬
‫ّٰ‬
‫الصلوہ والسلام علیک ناڑسول اللہ وع ی الک واصجانک ناجنیت اللہ‬
‫‘‘ دست بستہ ’’‬

‫ہ‬
‫ال ّٰلہ بعالی ‪ ،‬ڑحمن و ڑحیم ‪ ،‬حی و قیوم ج ّٰل سابہ و ع ّٰر اسمہ کے لئے تمام بعربقنن ہنن ۔ و ی جالق‬
‫حق ق‬
‫حق ق‬
‫کاپیات ‪ ،‬معیود ی ی اوڑ مسنعان ی ی ہے ۔ ہر عیت و بقص سے ناک ‪ ،‬ہر کمال والی اسی کی دات‬
‫ھ‬
‫ہے ۔ اس کی دات و ضقات ‪ ،‬اس کے اسما و اقعال منن کونی ت ی اس کا سرنک تہنن ‪ ،‬ست اسی‬

‫ھ‬
‫ھ‬
‫م‬
‫کے حیاج ہنن ‪ ،‬وہ تے پیاڑ ہے مگر کرتم ت ی ہے ۔ وہ عیی اوڑ تے پرواہ ہے ‪ ،‬مگر ڑحیم ت ی ہے ۔ اس کے‬
‫سوا خو کحھ ہے وہ ’’ العالمنن ‘‘ ہے اوڑ وہ خود عالم‬
‫ن‬
‫ڑت ‪ ،‬جالق اوڑ ڑاڑق ہے ۔ ہر کمال دانی‬
‫کا‬
‫ن‬
‫ّٰ‬
‫حقیق س ہ ہ‬
‫ح‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫خ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫ع‬
‫اوڑ ی ا ی کا ے ‪ ،‬و ی ش و و جا یا ے ‪ ،‬طا رنا ے ‪ ،‬ا ی کی طا اوڑ رم سے ابسان و‬

‫ل‬
‫عرت و کرامت م ی ۔ ال ّٰلہ بعالی جل سابہ تے بہ تمام کاپیات ا پئے جنیت مکرم ‪ ،‬ڑسول اکرم ‪ ،‬بوڑ‬
‫للعل‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫محس سقی مع‬
‫ی‬
‫ظ‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫م‬
‫ت‬
‫ن‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ط‬
‫م ‪ ،‬ع م ‪ ،‬ڑحمہ ن ‪ ،‬جاتم ا ن ﷺ کی جا ر پیانی ‪ ،‬و ی وجہ ق کاپیات ن ‪،‬‬
‫ک‬
‫م‬
‫مقصود کاپیات ہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی کی جلوق منن وہ ست سے اقصل و ا مل اوڑ احسن و احمل ہنن ‪،‬‬
‫ال ّٰلہ بعالی کی عطا سے وہ ہر کمال کے جامع ہنن ‪ ،‬عیوت و بقابص سے ناک ہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی تے اتہنن‬
‫اپیی دات و ضقات کی ڑوسن دلیل پیانا ‪ ،‬ان کی اطاعت نلاستہ ڑت بعالی کی اطاعت ہے ۔ ال ّٰلہ‬
‫کس ق‬
‫بعالی ان پر ُدڑود و سلام تھیحیا ہے ‪ ،‬وہ اخری پیی ہنن ‪ ،‬ان کے بعد ی سم کا کونی پیی تہنن ۔‬
‫ہماڑے پیی کرتم ﷺ ست کے پیی ہنن ‪ ،‬کاپیات کی ہر سے جاپیی ہے کہ وہ ال ّٰلہ بعالی کے پیی ہنن ۔‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫ان کی اس کاپیات منن بسربف اوڑی ہم پر ال ّٰلہ بعالی کا احسان طیم ہے ‪ ،‬منن ہماڑا وخود اوڑ ہر‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫بعمت ات ی کی ندولت م ی ہے ۔ ات ی کے صد قے منن اتمان و ابقان جاصل ہے ۔ ہماڑا دپن ’’‬

‫ک عہ‬
‫م‬
‫ن‬
‫اسلام ‘‘ ال ّٰلہ بعالی تے ہماڑے لئے بسید فرمانا اوڑ ا پئے جنیت مکرم ﷺ ے دڑ ب ے ن عطا‬
‫مک‬
‫ح‬
‫فرمانا ۔ اسی دپن کی مل ناپیدی منن ہماڑے لئے قوڑ و قلاج اوڑ ت شش و تجات ہے ۔‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ن‬
‫ال ّٰلہ بعالی جل سابہ کا احسان و ابعام ‪ ،‬قصل و کرم اوڑ تے پیاہ سکر ہے کہ اس تے ن ابسان اوڑ‬

‫مسلمان پیانا ۔ ا پئے پیاڑے اوڑ اخری ڑسول اکرم ﷺ کا امیی اوڑ علام پیانا ۔ ڑسول اکرم ﷺ‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ی کے دڑ بعے وسیلے سے منن ال ّٰلہ بعالی کی تہجان م ی اوڑ اتمان کی بعمت بصیت ہونی ۔ ڑسول‬
‫م‬
‫ع‬
‫اکرم ﷺ کی حیت اوڑ ب طیم ہماڑے اتمان کی جان اوڑ اساس ہے اوڑ ال ّٰلہ بعالی کے جکم سے‬
‫ع م‬
‫من معم س کم ک ہ‬
‫ک‬
‫ڑسول اکرم ﷺ کی ب طیم و حیت ہم پر لاڑم ہے اوڑ اس ن ولی ی ی نا ونا ی کی ونی‬

‫ہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ئ‬
‫ج‬
‫ک‬
‫ن‬
‫س‬
‫گیجابش تہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی کا ہم پر تے پیاہ کرم ہے کہ اس تے ن ا پ ے نیت رم ﷺ کی ب نت‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ڑت کرتم جل سابہ کا جنیا ت ی سکر کرپن وہ کم ہے ۔ ال ّٰلہ بعالی‬
‫سے بواڑا ہے ‪ ،‬اس کے لئے م ا پئے ّٰ‬
‫ہ‬
‫تھ‬
‫حق ق‬
‫ھ‬
‫کے جنیت مکرم ﷺ پر منن ُدڑود و سلام یحئے کی بوقیق عطا ہونا ت ی ہم پر ہماڑے معیود ی ی‬

‫ہ‬
‫کی جاص مہرنانی ہے ۔ ال ّٰلہ بعالی کے پیاڑے اوڑ اخری پیی کی ہر بسنت منن پیاڑی ہے ۔ ان کی‬
‫م‬
‫اڑواج و اولاد ‪ ،‬ان کے اصجات و احیات ‪ ،‬ان کی امت کے علما و اولیاے کاملنن کی حیت و عقیدت‬
‫مح ہ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ہماڑے لئے تہت اعراڑ ہے ۔ ان میاڑک اوڑ مقدس ہسنیون کی عقیدت و یت ن ماڑے‬
‫ع‬
‫قیلہ عالم ‪ ،‬حطیت ا ظم ‪ ،‬حضرت مجدد مسلک اہل س ّٰنت ‪ ،‬عاسق ڑسول‪ ،‬محت صجابہ و ال پیول‬
‫ل‬
‫سیگ‬
‫م ق‬
‫الجاج علامہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی بسنت اوڑ واب ی سے م ی ۔ مسلک خق‬

‫ھ ہ‬
‫حیگ‬
‫م‬
‫اہل س ّٰنت و حماعت پر اسنقامت اوڑ دپن ینن پر ت ی کا جدبہ اوڑ وَل وَلہ ت ی ات ی کی بعلیم و‬
‫پرپیت اوڑ قیصان سے ملا ۔ ال ّٰلہ بعالی کی ہم پر بہ تہت مہرنانی ہے کہ ہم ڑاہ خق پر ناپت و قاتم‬
‫ہ ص‬
‫ح‬
‫ہنن ‪ ،‬ال ّٰلہ بعالی ہماڑے اتمان کی حقاطت فرماے اوڑ منن یخ عقیدون پر قاتم ڑ ہئے ہوے‬
‫دپن و مسلک خق کی ڑنادہ سے ڑنادہ جدمت کر تے کی بوقیق سے بواڑے ‪ ،‬امنن‬

‫ل‬
‫کیانی سلسلہ ’’ ا حطیت ‘‘ کا ‪ 20‬وان سالابہ نادگاڑی مجلہ ات کی جدمت منن ننش کر تے *‬

‫ہوے ہم بہ اعیراف کر تے ہنن کہ گرستہ پرس عرس سربف سے ات نک ہماڑے ملک اوڑ دپیا‬

‫کس‬
‫تھر منن خو جالات ڑ ہے ان سے ہر کونی میاپر ہوا ‪ ،‬ہم ی قانل دکر کاڑکردگی کا مطاہرہ کنسے کر تے‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫؟ سخ ہے کہ اس جلے کی پیاڑی اوڑ اساعت ت ی ہماڑے لئے اسان تہنن ت ی‪ ،‬نلاستہ بہ ہماڑے‬
‫ک‬
‫ع‬
‫سل‬
‫قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا قیصان ہے کہ ہم اس ب سل کو قاتم ڑ ھے ہوے‬
‫ہنن ۔ حضرت الجاج قیلہ نیر سوکت حسن جان بوڑی ‪ ،‬حضرت نیرڑادہ علامہ اقیال احمد قاڑوقی‬

‫جنسے پرڑگون کی خوصلہ افرانی ہماڑے جدنات عقیدت کو پرھانی ہے اوڑ دپیا تھر سے احیات کا‬
‫م‬
‫ہ‬
‫اس جلے کا سوق اپیطاڑ دنکھ کر ہم اپیی میون کو پروے کاڑ لا تے ہنن ‪ ،‬ہماڑے قیلہ عالم حضرت‬
‫ع‬
‫حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کے فرڑند و جابسنن حضرت حطیت ملت علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی کی‬
‫گ م‬
‫ہ کح تھ‬
‫س‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ئ‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ط‬
‫عل‬
‫پ‬
‫سرپرسیی بہ ہو بو ساند م ھ ی بہ ر ن ۔ ا ے نا مال والد را ی تہ ا رحمہ کی رج وہ‬

‫ہ‬
‫ہمہ وقت کام کر تے ہنن ۔ ڑوڑابہ حطیات اوڑ اسقاڑ کی تھرماڑ کے ناوخود وہ َان تھک مجاہد ی‬

‫ہنن کہ ہمہ دم مسعول ڑ ہئے ہنن اوڑ کیی ادمیون کے پراپر کام کر تے ہنن ‪ ،‬ال ّٰلہ بعالی ع ّٰروجل ا پئے‬
‫جاص قصل و کرم سے اتہنن بواڑے ‪،‬‬
‫امنن‬
‫م‬
‫ع‬
‫ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے اس حہان قانی منن تہت حیضر عرصہ‬
‫پ ک‬
‫س تہن ہ ل‬
‫من تھ‬
‫ل‬
‫ق‬
‫ی‬
‫ک‬
‫ی‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫گراڑا‪ 33 ،‬رس ھ ڑنادہ مدت ماڑ ن ونی ن اس ل مدت ن ی ات ون تے یہا‬
‫پیطیمن م ک تھ‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ن‬
‫نلاستہ صدبون کے کام کئے اوڑ ا پئے کئے خو سیکرون اداڑے اوڑ ن ل ر ی ن رنا ن‬
‫ہ‬
‫۔ ہماڑی ناننن ی ناننن ہنن وہ کام کر تے تھے ۔ اتھاڑہ ہراڑ سے ڑاند حطیات بو ضرف پرے‬

‫پرے احیماعات کے ہنن ۔ تماڑ حمعہ کے حطیات ‪ ،‬دقاپر اوڑ اداڑون منن حطات ‪ ،‬ڑے دبو ناکسیان‬
‫م‬
‫گ‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ت‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫ک‬
‫ت‬
‫ی‬
‫ن‬
‫سے بسری بقاڑپر ‪ ،‬ھرابون کی بقاڑپت ‪ ،‬ضر دڑوس و یرہ و بو ا ی سماڑ ی ن کیا گیا ۔ ان‬
‫سھ ک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫کے اسقاڑ ت ی کم تہنن اوڑ ی ی یھن تھے ‪ ،‬پن اسانی اوڑ سہولیون سے ساند وہ اسیا ی تہنن‬
‫لگ م گ‬
‫م‬
‫سل‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫ق‬
‫ل‬
‫م‬
‫تھے۔ ان کی حیات ل جدوحہد سے یاڑت ے ۔ مہ و ت و ون ن رے ڑ ے ‪ ،‬طا عہ‬
‫ھ‬
‫و تحقیق اوڑ بصنیف و نالیف کا سعف ت ی جاڑی ڑہیا ۔ مداڑس و مساجد ‪ ،‬سیی اداڑون اوڑ پیطیمون‬
‫ک‬
‫کی سرپرسیی ‪ ،‬جا تے کنئے اموڑ وہ احساس دمہ داڑی ڑ ھئے ہوے تھربوڑ اتجام د پئے تھے ۔ مسلک‬

‫خ ک لئ ہ لم‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ع‬
‫ح‬
‫خ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ی‬
‫ق ے ے ر ے اوڑ ر ر ے ر ان کا رداڑ تے ناک اوڑ ر جک داڑ ڑہا ۔ وہ رأت و ت اوڑ‬
‫خق و صداقت کے میالی پیکر تھے ۔ اکاپر کے لئے ان کی بواضع اوڑ اصاعر کے لئے ان کی سققت کی‬

‫میال دی جانی ہے ‪ ،‬نلاستہ وہ عہد افرپن کییر الصقات ‪ ،‬سحصیت تھے ۔ کییر الحہات ان کی جدمات‬
‫تھی ہم سماڑ تہ‬
‫س‬
‫ہ‬
‫سک‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ان‬
‫ڑت بعالی کے‬
‫ر‬
‫ان‬
‫سے‬
‫ا‬
‫‪،‬‬
‫ے‬
‫کام‬
‫سان‬
‫ا‬
‫سا‬
‫ون‬
‫ی‬
‫دادڑ‬
‫کی‬
‫ک‬
‫ر‬
‫۔‬
‫ے‬
‫ر‬
‫ن‬
‫ّٰ‬
‫ک‬
‫کس ہ‬
‫قصل و کرم کے سوا کیا ہنن کہ ہر کونی والہ و سیدا ہے اوڑ ہر ی کا ت ی کہیا ہے کہ حش قدڑ وہ اس‬
‫ہ کس‬
‫پر سقیق و مہرنان تھے ساند ی ی اوڑ پر ہون گے ۔ مسلک خق اہل س ّٰنت و حماعت کے لئے ان‬
‫ک‬
‫سھ‬
‫کے میالی کاڑ ہاے تمانان کا اعیراف ی ی کو ہے ۔ اتہون تے لا ھون کو دپن و مسلک کی جدمت کا‬

‫م‬
‫جدبہ اوڑ وَل وَلہ دنا ‪ ،‬سرگرم کاڑکیان کی قوج طقر موج پیاڑ کی ۔ اج الیک پرانک ی دنا سے‬
‫م‬
‫سہرت نانا تہت اسان ہوگیا ہے مگر اتہون تے بو سیابہ ڑوڑ اپیی َان تھک حیت سے بہ سان نانی کہ‬
‫سمیون منن اتہنن‬

‫ھ م‬
‫م‬
‫جانا تہجانا جانا ‪ ،‬وہ علما و مسا تخ منن ت ی حیوت و جیرم تھے‬

‫سھ‬
‫۔ دل موہ لنئے وا لے اجلاق کرتمابہ سے اتہون تے ی ی کو اپیا گروندہ پیالیا تھا۔ اتہون تے سہرت‬
‫م‬
‫کے لئے کام تہنن کیا تھا ان کے میالی کام تے اتہنن ہر جاص و عام منن ممیاڑ و جیرم پیانا تھا ۔‬

‫ک‬
‫م‬
‫م کس‬
‫مس‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫ک‬
‫س‬
‫ھ‬
‫ڑو ی میر حضرت میان حمد تحش علتہ الرحمہ اف ری ربف ے لام ے وا ے سے وڑ‬

‫م‬
‫مولانا علام ڑسول ( جک سواڑی ) انک عر صے سے پرطاپیا منن قیم ہنن ۔ ان کے فرڑند جاقظ سعید‬
‫مک‬
‫ع‬
‫احمد کے حقظ فران مل ہو تے کی بقرپت منن حضرت حطیت ا ظم مدعو تھے ۔ مولانا علام‬
‫ع‬
‫ڑسول صاحت کا فرمانا ہے کہ ہراڑون افراد ضرف حضرت حطیت ا ظم کی ڑناڑت کے لئے اے‬

‫ع‬
‫ک‬
‫تھے ۔ اتہنن دن ھیا اوڑ ُسنیا لوگون کی عید ہونا تھا ۔ ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ‬
‫س‬
‫ل‬
‫ال ّٰلہ علتہ کے اسیاد مکرم یخ القران حضرت مولانا علام ع ی اسرقی اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا فرمان‬
‫ع‬
‫ہے کہ حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کو علم لدنی سے وافر حصہ ملا تھا ‪ ،‬وہ فرما تے تھے کہ کون‬
‫س‬
‫ل‬
‫سا موضوع اوڑ مسیلہ ہے خو مولانا اوکاڑوی تے پیان تہنن کیا ۔ قطت مدپتہ ‪ ،‬جلیفہ اع ی حضرت یخ‬

‫لع‬
‫ح‬
‫ّٰ‬
‫م‬
‫ح‬
‫پ‬
‫گ‬
‫ض‬
‫عل‬
‫ل‬
‫ض‬
‫العرت وا م رت ولانا ساہ یاء الد ن احمد مدنی قادڑی ڑحمہ ا لہ تہ سے ناڑہا بہ سیا یا کہ‬
‫گ‬
‫کس‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ی‬
‫حش ی کو سجا عاسق ڑسول دن ھیا ہو وہ مولانا اوکاڑوی کو دنکھ لے ۔ عوت ڑمان خ رم‬
‫م سم‬
‫حضرت قیلہ نیر سید حمد ا عیل ساہ تجاڑی ( حضرت کرمان وا لے ) ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے ہماڑے‬
‫م‬
‫لہ‬
‫حضرت قیلہ عالم کو بہ بساڑت خود سیانی کہ ’’ ات ناڑگاہ ا ی اوڑ ناڑگاہ ڑسالت منن حیوت ہنن‬
‫ص‬
‫‘‘ ۔ پرڑگون کے بہ اڑسادات ہماڑے حضرت کی عظمت وا خ کر تے ہنن اوڑ ان سے ہماڑی‬
‫م‬
‫حیت و عقیدت مرند تحتہ کر تے ہنن ۔ ہم ا پئے قاڑننن سے سرمیدہ ہنن کہ اپیی مدت گرڑ جا تے‬
‫کے ناوخود ہم کونی جاطر خواہ کاڑ گراڑی ننش بہ کرسکے ‪ ،‬کونی سانان سان جدمت بہ کرسکے ۔ ہر‬

‫ل‬
‫کس‬
‫ھ‬
‫سال بہ مجلہ ت ی ڑنادہ سے ڑنادہ ابصال بوات کی عرص سے ی طوڑ پیاڑ کیا جانا ہے ‪ ،‬ا حمد ل ّٰلہ ڑت‬

‫للعل‬
‫س‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ّٰ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ض‬
‫ا ن ‪ ،‬اللہ کا ر ے کہ یون ن ابصال بوات کا ا یمام ونا ے ا وڑ ماڑے رت‬
‫م‬
‫ع‬
‫حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کو خراج عقیدت و حیت ننش کیا جانا ہے ۔‬
‫ع‬
‫ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے مسلک خق کی پرو تخ و اساعت اوڑ *‬
‫م‬
‫ن کھ‬
‫اہل س ّٰنت کو میجد و یظم کر تے کے لئے ‪0032‬ء منن حماعت اہل س ّٰنت کی نیاد ڑ ی اوڑ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ط‬
‫ح‬
‫ی‬
‫پ‬
‫م‬
‫ص‬
‫ت‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫ض‬
‫ق‬
‫ابقلانی کاڑ گراڑی ننش کی۔بقصلہ بعالی ر ر ے ی ن بہ یم عال ونی اوڑ ملک ر‬
‫س سظ‬
‫ل‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ہ‬
‫س‬
‫منن علما و عوام یظم ہوکر تمانان قوت ناپت ہوے۔ عا ی اوڑ سیا ی ر خ ر ا ل ّٰنت و‬

‫ص‬
‫ہ‬
‫وا خ پرپری جاصل ڑ ی ۔ اہل س ّٰنت کے مجالقنن دبوپیدی وہاپیون کو بہ کت گواڑا ہونا ؟ اتہون‬
‫ع‬
‫تے اپیی ڑبشہ دواپیان نیر کردپن ۔ ‪08‬ء کی دہانی منن اتہون تے ’’ ُس ّٰیی کوبسل ‪ ،‬سواد ا ظم اہل‬

‫ل‬
‫س ّٰنت ‘‘ جنسے نام لکھ کر خود کو ’’ ُس ّٰیی ‘‘ ناپت کرنا جاہا اوڑ ات ’’ اہل س ّٰنت وا حماعت ‘‘‬
‫ص‬
‫ح‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫کہلا تے کا جنن کرڑ ہے ہنن ‪ ،‬الیک پرانک اوڑ پرپت ی دنا سے یخ ا عقیدہ ا ل س ّٰنت و حماعت (‬
‫ہ‬
‫پرنلوی ) کے جلاف طرج طرج کی ساڑسنن ہوڑ ی ہنن ۔ اتہنن ضرف اپیی مقاد پرسیی سے عرص‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫کس‬
‫ہے اوڑ اس کے لئے وہ ی جلال و خرام کی پرواہ ت ی تہنن کر تے ‪ ،‬ا پئے ی قیون کے جلاف ان کا‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫مل خود ان کے لئے ناڑنابہ ہے ۔ دپیا تے جان لیا ہے کہ دبوپیدی وہانی ی ’’ طالیان اوڑ اوڑ القاعدہ‬
‫جک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫سے وابستہ ہنن ۔ وطن عرپر کے مران ت ی تحونی جا پئے ہنن کہ ت ی لوگ تجرنک ناکسیان کے‬

‫ک‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ت‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫گ‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ب‬
‫ن‬
‫س‬
‫ھ‬
‫ت‬
‫س‬
‫ف‬
‫م لا جالف ے اوڑ ات ی ’’ رے ر رو ش ‘‘ ن ر ملک ن رقہ واڑابہ یدگی‬
‫ہ‬
‫مق‬
‫اوڑ ی ی سرگرمیون منن تمانان ہنن ۔ ات ی کی وجہ سے دپیا تھر منن اسلام اوڑ مسلمابون کا علظ‬
‫ص‬
‫ح‬
‫بعاڑف ہوڑہا ہے ۔ ا بسے منن یخ العقیدہ اہل س ّٰنت و حماعت ( پرنلوی ) علما و مسا تخ کو ابش‬
‫صح‬
‫من لح‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ق‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ی‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫ق‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ی‬
‫ح‬
‫ق‬
‫مل‬
‫س‬
‫ّٰ‬
‫ن ا ے کی تجاے یجد و ق و ر ت کی خ یادت رنی جا ے اوڑ ا ل نت ے وق ے‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫تحقظ کے لئے جدوحہد کرنی جا ہئے ۔ اقواج ناکسیان منن ناجال یخ ا عقیدہ ا ل س ّٰنت و حماعت کی‬
‫ک م ب کس سظ پ تھ‬
‫ہ‬
‫کیاننن میطوڑ تہنن کی جاڑ ی ہنن ‪ ،‬اتہنن انادی منن ان کے پیاست ے طا ق ی خ ر ی‬
‫ہ ہ ہ‬
‫تماپیدگی تہنن دی جاڑ ی ۔ منن ت ی ناوڑ کرانا ہے کہ اہل س ّٰنت و حماعت کا امن بسید اوڑ محت‬
‫ک‬
‫وطن ہونا ان کی خونی ہے ‪ ،‬ہرگر مروڑی تہنن ۔ بقصلہ بعالی ناکسیان پیا تے منن اہل س ّٰنت‬
‫ھ ہ‬
‫تمانان تھے ۔ ان ساء ال ّٰلہ ات ملک تجا تے منن ت ی و ی کلیدی کرداڑ ادا کرپن گے ۔‬

‫م‬
‫گرستہ پرس مرکری عرس سربف کی بقرپت منن اہل حیت و عقیدت کی طرف سے ننش کئے *‬
‫م‬
‫س ع ل‬
‫جا تے وا لے ابصال بوات منن حیات یخ مر ع ی ( لاہوڑ ) ‪ ،‬الجاج ضوقی سرداڑ حمد (اوکاڑا) ‪،‬‬
‫م‬
‫س م‬
‫ع سم‬
‫ج‬
‫م‬
‫ک‬
‫ق‬
‫ک‬
‫م‬
‫الجاج یخ حمد اسرف و ڑققاء ( نیر ل ) ‪ ،‬ر ر یصان مدپتہ ‪ ،‬د وت ا لا ی ( راحی )‪ ،‬ولانا‬
‫م‬
‫م‬
‫علام احمد ڑصا قادڑی ( دعوت اسلا ی ) ‪ ،‬الجاج حمد ابوڑ عرف اوکاڑوی (کراحی ) ‪ ،‬مولانا قاڑی‬

‫لق م‬
‫م‬
‫ق‬
‫ح‬
‫م‬
‫حمد حقیظ (احھرہ ‪ ،‬لاہوڑ) ‪ ،‬مولانا قاڑی گل حہان صدب ی ( کراحی ) ‪ ،‬مولانا قاڑی عیدا یوم ود (‬
‫م‬
‫کراحی ) ‪ ،‬مولانا قاڑی علام عیاس بقش پیدی مع فرڑندان( بوسہرہ وڑکان ) ‪ ،‬جاقظ حمد ناضر‬
‫م‬
‫م‬
‫س‬
‫(کراحی ) ‪ ،‬یخ پیک حمد ( سرق بوڑ سربف ) ‪ ،‬پرکانی قاؤندبسن کے جاحی حمد عاڑف پرکانی ( کراحی‬
‫م‬
‫ل‬
‫س‬
‫) ‪ ،‬نیر حمد ڑاسد ابوت فرب ی ( کراحی ) ‪ ،‬مولانا قاڑی علام ع ی (کراحی ) ‪ ،‬مولانا قاڑی ناج تہادڑ‬
‫م‬
‫جان ( کراحی ) ‪ ،‬جاقظ حمد سقیق بوڑانی ( ملیان ) قاڑی علام قادڑ ننسم ( کراحی ) ‪ ،‬مولانا علام‬
‫بوڑانی بقش پیدی (کراحی ) ‪،‬میعدد خواننن اوڑ میعدد احیات تے جاصی بعداد منن حیمات فران کا‬
‫م‬
‫ُ‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ن‬
‫گ‬
‫خ‬
‫ج‬
‫ن‬
‫ہدبہ ننش کیا اوڑ ُدڑود سربف کا ست سے ڑنادہ ہدبہ ش وا ن ل ڑاڑ نیت کی طرف سے تھا‬
‫۔ ‪ 20‬وپن سالابہ عرس میاڑک کی وہ ُڑوداد خو ناک و ہید کے میعدد تمانان احیاڑات و خراند اوڑ‬
‫‪:‬ڑسانل منن سابع ہونی ‪ ،‬وہ ہم تہان تھر دڑج کرڑ ہے ہنن ‪ ،‬ملاحطہ ہو‬

‫ع‬
‫م ق‬
‫حماعت اہل س ّٰنت کے نانی حطیت ا ظم حضرت مولانا حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا ’’‬
‫ل‬
‫ُ‬
‫‪ 20‬وان سالابہ دو ڑوڑہ مرکری عرس میاڑک جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت ‪ ،‬گلسیان اوکاڑوی ( سو جر‬
‫ناڑاڑ ) کراحی منن حست سابق ماہ ڑحت کی ننسری حمعرات و حمعہ تمطابق ‪ 25‬اوڑ ‪ 24‬خون‬
‫م ل لم‬
‫ُ‬
‫گ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ج‬
‫پ‬
‫پ‬
‫‪2800‬ء کو مولانا اوکاڑوی اکاد ی (ا عا ی ) اوڑ ل ڑاڑ نیت رست ے ڑ ر ا یمام وا ہابہ‬
‫عقیدت و اجیرام سے میانا گیا ۔‬

‫ل‬
‫اس موقع پر کیانی سلسلہ ’’ ا حطیت ‘‘ کا سالابہ نادگاڑی مجلہ سابع ُہوا ۔ ملک اوڑ نیرون ملک سے‬
‫علماء و مسا تخ اوڑ عقیدت مید حضرات و خواننن کی پری بعداد تے عرس میاڑک کی بقرپیات منن‬

‫سرکت کی ۔ میعدد جابقاہون ‪ ،‬دڑس گاہون ‪ ،‬س ّٰیی پیطیمون اوڑ جلقون کی طرف سے حضرت حطیت‬
‫گ‬
‫ع‬
‫ُ‬
‫ح‬
‫ت‬
‫ی‬
‫ا ظم علتہ الرحمہ کے مرقد اقدس پر جادڑ بوسی و گل ناسی کی گیی ۔ حضرت سیدنا دانا خ ش اوڑ‬
‫تھ‬
‫عل‬
‫گ‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ص‬
‫ح‬
‫حضرت سیر ّٰڑنانی میان صاحت سرق بوڑی ڑحمہ ال ّٰلہ یہم کے مراڑات سے ی یی و ی‬
‫ہ‬
‫جادڑون کو علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی تے علما و مسا تخ اوڑ عقیدت میدون کے مراہ ا پئے والدپن‬
‫کرتمنن علیہما الرحمہ کے مرقد میاڑک پر خرھاکر عرس میاڑک کی بقرپیات کا اعاڑ کیا ۔‬

‫لہ‬
‫جادڑ بوسی کے وقت بعت سربف ‪ ،‬دکر اسم ا ی اوڑ صلوہ و سلام کا وڑد کیا گیا ۔ ( علامہ کوکت‬

‫بوڑانی اوکاڑوی کے اعلان کے مطابق تمام اہل عقیدت تے مراڑ سربف پر کیرون کی ڑنادہ جادڑپن‬
‫ک لئ م مس‬
‫ع‬
‫ک‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ی‬
‫خرھا تے کی تجا تے حضرت حطیت ا ظم کے ابصال بوات ے ے یعدد ق افراد و بوسا ن‬
‫م‬
‫ق‬
‫م ع‬
‫ب سیم کنن ) ۔ عرس کے احیماع سے قیی ا ظم افربقا حضرت مولانا حمد اکیر ہراڑوی ‪ ،‬حضرت نیر‬
‫م‬
‫م م‬
‫ل‬
‫سید عظمت ع ی ساہ ہمدانی ‪ ،‬قیی حمد عیاس ڑضوی ‪ ،‬مجدوم داکیر سید حمد اسرف حیلانی ‪ ،‬جاحی‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫حمدجنیف طیت ‪،‬مولانا ضوقی حمد لطیف بقش پیدی ‪ ،‬صاحت ڑادہ حمد قصل الرحمن اوکاڑوی ‪،‬‬

‫م‬
‫م‬
‫س ع‬
‫ق‬
‫مولانا حمد سعیت قادڑی ‪ ،‬طاڑق حیوت صدب ی ‪ ،‬ڑقیق اہل س ّٰنت سید ڑقیق ساہ ‪ ،‬پروقنسر یخ قیل‬
‫احمد اوڑ علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی تے حطات کیا ۔ ا پئے حطیات منن مقرڑپن تے کہا کہ حطیت‬
‫م ع‬
‫ع‬
‫م ق‬
‫ا ظم مولانا حمد س یع اوکاڑوی ؒ تے اپیی حیضر مر منن کیی اداڑون اوڑ پیطیمون سے پرھ کر پن‬
‫ہ س ّٰ ک قج ہ ن م مل ک عط مح‬
‫س‬
‫پیہا وہ جدمات اتجام دپن حن پر تمام ا ل نت و ر ے وہ لاستہ لک و ت ے یم ن‬
‫مصطق‬
‫م‬
‫ن‬
‫ہنن‪ ،‬خق گونی و تے ناکی ‪ ،‬اسنقامت اوڑ خرأت و ہمت کے وہ میالی پیکر تھے اتہنن ناڑگاہ ی ن‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫مقیولیت جاصل ت ی اوڑ عسق ڑسول (ﷺ) منن اتہنن اع ی مقام عطا ہوا تھا ان کی ندولت‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫لا ھون کے عقاند و اعمال کی اصلاج ہونی ‪ ،‬حطیت ا ظم کا لقت ات ی کو سحیا ہے ‪ ،‬ان سا حطیت‬

‫صدبون منن طاہر ہونا ہے۔ تجرنک قیام ناکسیان ‪ ،‬تجرنک تحقظ حیم پیوت ‪ ،‬تجرنک دقاع ناکسیان‬
‫ہ م مصطق‬
‫مصطق‬
‫م‬
‫م‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ح‬
‫ق‬
‫ڑس‬
‫اوڑ تجرنک بطام ی ن ان کی جدوحہد قا ل ک ے ‪ ،‬قام ی (ﷺ) ے ت ظ ن‬
‫م‬
‫ان کا کرداڑ اوڑ جدمات قانل بقلید ہے ۔ اتہون تے ڑندگی تھر حیت ڑسول سے ست کو سرساڑ کر تے‬
‫ھ‬
‫منن کاڑہاے تمانان اتجام د پئے ‪ ،‬ان کی سہرت و مقیولیت اج ت ی سمیون منن ڑوڑ افرون ہے‬
‫اوڑ ان کی تجرپر و بقرپر کا قیصان جاڑی ہے‪ ،‬وہ اہل س ّٰنت کی تہجان تھے ‪ ،‬سماحی اوڑ سیاسی سعیون‬
‫ھ‬
‫منن ت ی ان کی جدمات ناقانل فراموس ہنن ۔‬

‫احیماع منن ابصال بوات کر تے ہو تے تجنش لاکھ اتھیر ہراڑ جاڑ سو پینیالنش‬
‫ح‬
‫(‪ )237007445‬فران کرتم ‪ ،‬ت ھیر لاکھ حھ ہراڑ اکیاسی ( ‪ ) 037027800‬فرانی سوڑننن ‪،‬‬
‫سیرہ لاکھ ناون ہراڑ نا تخ سو ننش (‪ ) 007327328‬فرانی انات ‪ ،‬میعدد فرانی ناڑے ‪ ،‬پیابوے‬
‫ک‬
‫کروڑ ا ینش لاکھ سی ّٰاون ہراڑ نا تخ سو پرابوے (‪ُ )027507307305‬دڑود سربف ‪ ،‬ننن کروڑ‬

‫اڑننش لاکھ حھیابوے ہراڑ اتھ سو ننش مرپتہ (‪ )57507027058‬کلمہ طنتہ اوڑ بعیر سماڑ کے‬
‫م‬
‫ع‬
‫اسماے حستہ اوڑ حیلف میعدد َاوڑاد کے وڑد ‪ ،‬انک حخ ‪ 0 ،‬مرے اوڑ ہراڑون بواقل کا ہدبہ ننش کیا‬
‫م‬
‫ج م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ن‬
‫گ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫خ‬
‫ج‬
‫ن‬
‫ع‬
‫گیا۔ ابصال بوات منن ش وا ن ل ڑاڑ نیت کاحصہ تمانان تھا۔ا نیا ی دعا لامہ و ت‬
‫ع‬
‫بوڑانی اوکاڑوی تے کی۔ حطیت ا ظم کے کم سن بو تے ڑپن سیجانی اوکاڑوی تے سرکاء کا سکربہ ادا کیا‬
‫۔ حمعہ ‪ 24‬خون ‪2800‬ء کو دپیا تھر کے ‪ 42‬ممالک منن عقیدت و اجیرام سے مساجد و مراکر‬
‫اہل سنت منن سالابہ عالمی بوم حطیت اعظم میانا گیا اوڑ احیماعی طوڑپر ابصال بوات کے ل ےئ‬
‫قاتحہ خوانی ہونی۔‬

‫ل‬
‫مرکری عرس سربف کی بقرپیات منن حضرت الجاج نیر سوکت حسن جان بوڑی ‪ ،‬نیر ع ی حسن‬
‫م‬
‫م م‬
‫ق‬
‫ق‬
‫بقش پیدی ‪ ،‬مولانا مر الدپن سیالوی ‪ ،‬قیی حمد اضف ‪ ،‬جلیفہ حمد اسلم ‪ ،‬مولانا گل حہان صدب ی ‪،‬‬

‫م‬
‫م‬
‫مولانا حمد عرقان ضیانی ‪ ،‬مولانا قاڑی ناج تہادڑ ‪ ،‬صاحت ڑادہ فرحت حسن بوڑی ‪ ،‬مولانا حمد‬
‫ل‬
‫م ق‬
‫سربف بقش پیدی ‪ ،‬سید ابعام ا حق ‪ ،‬نیر حی حمد س یع‪ ،‬مولانا جکیم سید اسرف اسرقی ‪ ،‬قاڑی علام‬
‫حیلانی ‪ ،‬مولانا علام بوڑانی بقش پیدی ‪ ،‬مولانا اپراڑ احمد ڑحمانی‪ ،‬مولانا ڑناص الدپن قادڑی ‪ ،‬مولانا‬
‫تح‬
‫س‬
‫ہل‬
‫ن‬
‫ت‬
‫ل‬
‫م‬
‫ک‬
‫ع‬
‫رت‬
‫علام فرند حسیی ‪ ،‬مولانا ابوت الرحمن ‪ ،‬مرڑابوند ‪ ،‬مولانا عیدالرڑاق یی ‪ ،‬یدا م یم‪ ،‬ولانا‬
‫ح‬
‫م‬
‫امجد ت سنیی‪ ،‬صاحت ڑادہ داکیر حمد سیجانی اوکاڑوی ‪ ،‬الجاج صاحت ڑادہ جامد ّٰڑنانی اوکاڑوی ‪،‬‬
‫س م‬
‫م‬
‫م‬
‫لاہوڑ سے مرڑا حمد اڑساد معل اوڑ حمد ناضر‪ ،‬اوکاڑا سے الجاج یخ حمد اکرم ‪ ،‬قاڑی جلیل الرحمن ‪،‬‬
‫ح‬
‫پرم قیصان واڑپتہ کے سید عیدالماجد واڑنی مع احیات‪ ،‬امربکا سے حیات طاڑق اقیال ‪ ،‬ات من‬
‫م‬
‫م‬
‫مصطق‬
‫مجاہدپن ی کے جاقظ حمد جنیف اوڑ حمد اکیر بقش پیدی ‪ ،‬مولانا اسلام الدپن ‪ ،‬الجاج بوقیق‬
‫م‬
‫م‬
‫س م‬
‫ل‬
‫احمد قاتم جانی ‪ ،‬الجاج یخ حمد بعیم بقش پیدی ‪ ،‬مولانا حمد اجیر ع ی بوڑی ‪ ،‬مولانا حمد شہ ڑاد پرانی‬
‫س م‬
‫س‬
‫س‬
‫‪ ،‬الجاج یخ جالد ڑسید بقش پیدی ‪ ،‬حیات یخ جاوند اقیال ‪ ،‬یخ حمد اقیات ‪ ،‬الجاج ڑحیم الدپن ‪،‬‬
‫حیات عیدالعقاڑ داؤد ‪ ،‬الجاج ڑقیق سلیمان‪ ،‬الجاج حسیی نانا ‪ ،‬جاحی جاوند معرقانی ‪ ،‬سید پیوپر ساہ ‪،‬‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫س‬
‫الجاج حمد ابوت فرب ی‪ ،‬جاحی حمد ابوڑ اوکاڑوی ‪ ،‬حیات بسیر یمن ‪ ،‬ملک پیاڑ احمد قادڑی ‪ ،‬سید‬
‫ظ‬
‫م‬
‫حس‬
‫مل‬
‫ص‬
‫ع‬
‫ک‬
‫م‬
‫س‬
‫ص‬
‫ک‬
‫م‬
‫ک‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ینن ساہ کا ی اوڑ یعدد عرڑ ن تے ح و ی سر ت کی ۔ یی میدنا ا ر ن ے دڑ ب ے ‪07888‬‬
‫تح‬
‫تح‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫س‬
‫سے ڑاند مقدس مقامات اوڑ مراڑات کی ڑناڑت کرانی گیی ۔ ا ن بو وانان ا ل نت ‪ ،‬ا ن‬
‫طلیاء اسلام اوڑ پرم قیصان واڑپتہ تے ا پئے مراکر منن عرس سربف کی بقرپیات میعقد کنن ۔‬

‫احیاڑات و خراند تے سالابہ عالمی بوم حطیت اعظم کے موقع پر حصوصی مصامنن سابع کئے اوڑ پی ےل‬
‫وڑن حے نلر تے حصوصی پروگرام ننش کئے‬

‫ع‬
‫۔ ان ساء ال ّٰلہ بعالی حضرت حطیت ا ظم کا ‪ 20‬وان سالابہ عرس میاڑک ماہ ڑحت کی ننسری‬
‫حمعرات و حمعہ ‪ 80-80‬خون‪2802‬ء کومیانا جا تے گا۔‬
‫ل‬
‫) ڑبوڑت ‪ :‬حمید ال ّٰلہ قادڑی ‪ ،‬حیدڑ ع ی قادڑی (‬
‫عرس سربف کی بقرپیات منن ملک و نیرون ملک سے عقیدت میدون تے تھربوڑ سرکت کی اوڑ *‬
‫لم‬
‫دپیا کے ‪ 42‬ملکون منن اوڑ ملک کے ہر پرے حھو تے سہر منن ابصال بوات کے لئے سالابہ عا ی‬
‫ع‬
‫بوم حطیت ا ظم میانا گیا ۔ ممیاڑ اسکالر حیات داکیر عامر لیاقت حسنن تے ا پئے مسہوڑ پروگرام ’’‬
‫َ‬
‫ع‬
‫عالم اوڑ عالم ‘‘ کا انک حصوصی پروگرام حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی ناد منن پرپیت دنا‬
‫اوڑ والہابہ انداڑ منن خراج عقیدت ننش کیا ۔ اس پروگرام منن حضرت حطیت ملت علامہ‬
‫ھ‬
‫کوکت بوڑانی اوکاڑوی تے ت ی سرکت کی ۔ میعدد علماے کرام اوڑ عقیدت میدون کے ناپرات‬

‫ھ‬
‫ھ‬
‫ت ی پروگرام منن سامل کئے گئے ۔ اس پروگرام کو تہت بسید کیا گیا ۔ دھوم نی وی تے ت ی اپیی‬

‫بسرنات منن عرس سربف کا ندکرہ کیا۔ ڑوڑنامہ حیگ کراحی ‪ ،‬لاہوڑ ‪ ،‬لیدن ‪ ،‬ڑوڑنامہ بواے وقت‬

‫کراحی ‪ ،‬لاہوڑ ‪ ،‬ماہ نامہ عقیدت ( حیدڑ اناد ) ‪ ،‬ماہ نامہ حہان ڑصا ( لاہوڑ ) ماہ نامہ ڑصاے‬
‫مصطق‬
‫ی (گوخران والا) ‪ ،‬ماہ نامہ تحقظ ( کراحی ) ‪ ،‬ہقت ڑوڑہ اڑص ناک ( حیدڑ اناد )اوڑ ہقت‬
‫عْ‬
‫ڑوڑہ کاڑوان وطن (حیدڑ اناد ) تے حصوصی مصامنن اوڑ سالابہ بوم حطیت ا ظم کے اسیہاڑ سابع‬
‫کئے ۔‬

‫م‬
‫دپیا تھر کے میعدد ممالک کی مساجد اہل س ّٰنت اوڑ مراکر منن علما و مسا تخ ‪ ،‬اساندہ و طلیا ‪ ،‬حیلف *‬
‫پیطیمون کے سرپراہان و کاڑکیان اوڑ عقیدت میدون تے ‪ 24‬خون ‪2800‬ء کو ‪ 20‬وان سالابہ‬
‫م‬
‫من حض م م‬
‫حط ع‬
‫لم‬
‫س‬
‫ح‬
‫ظ‬
‫ح‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ق‬
‫ک‬
‫م‬
‫ق‬
‫عا ی بوم یت ا م یا تے کا ا یمام یا ۔ اوکاڑا ن رت ولانا مد ا یال یی ‪ ،‬جا ظ مد‬
‫س م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫اکرم ‪ ،‬ضوقی الجاج سرداڑ حمد ‪ ،‬سا ی وال منن جکیم یخ حمد سعیداوڑ ان کے احیات و ڑققاء ‪ ،‬پیوکی‬
‫م‬
‫س م‬
‫منن یخ حمد جلیل‪ ،‬ملیان منن جاقظ حمد سقیق بوڑانی ‪ ،‬تہاول بوڑ منن جنید ڑصا قادڑی ‪ ،‬سیال‬
‫م‬
‫کوت منن الجاج خواجہ حمد بعیم اوڑ لاہوڑ منن حضرت نیر ڑادہ علامہ اقیال احمد قاڑوقی تے ا پئے‬
‫م‬
‫م‬
‫جلفہ احیات منن اوڑ احھرہ لاہوڑ کے مولانا قاڑی حمد حقیظ ‪ ،‬قاڑی حمد بعیم ‪ ،‬بوخوان ڑہ تما حیات‬
‫ک‬
‫م‬
‫م مح جلی سی عم عل‬
‫م‬
‫م‬
‫س‬
‫ق‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ح‬
‫ص‬
‫خ‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫حمد بواڑ رل ‪ ،‬جا ل ب ت ے وا ے سے یاڑ یت حیات لک مد ل ‪ ،‬خ ر ی ‪،‬‬
‫م‬
‫س ع‬
‫حیات میان احمد‪ ،‬یخ قیل احمد ‪ ،‬قاڑی حمد بوبش قادڑی ‪ ،‬ڑاول پیدی اوڑ اس کے فرت و خواڑ‬

‫ع‬
‫منن حیات مولانا قاڑی مظہر عیاس اوڑ ان کے ڑققاء تے میعدد مقامات پر سالابہ بوم حطیت ا ظم‬
‫ح‬
‫میاکر ابصال بوات کا اہیمام کیا ۔ کراحی سہر منن ات من بوخوانان اسلام کے سرپراہ حیات الجاج‬

‫م‬
‫ع‬
‫طاڑق حیوت تے اپیی پیطیم کے ہر بوپت منن سالابہ بوم حطیت ا ظم میا تے کا حست سابق اہیمام‬
‫ڑکھا ۔ پرم قیصان واڑپتہ کے حیات سید عیدالماجد واڑنی تے اپیی عقیدت کا تمانان اظہاڑ کیا ۔سجر‬

‫ع‬
‫ھ‬
‫قاؤندبسن کے ڑپر اہیمام ت ی سالابہ بوم حطیت ا ظم میانا گیا اوڑ حصوصی پروگرام میعقد ہوا حش‬

‫منن وابش حییرمنن حیات سید ڑقیق ساہ اوڑ دنگر تے حطات کیا ‪ ،‬اس پروگرام کی احیاڑات منن‬
‫م‬
‫تمانان جیرپن سابع ہوننن ۔ پرطاپیا کے ناناے اہل س ّٰنت مولانا ابوبعیم حمد بوسیان القادڑی ‪،‬‬
‫م م‬
‫نیرڑادہ مصیاج المالک لقمابوی ‪ ،‬الجاج قیی حیوت الرحمن ‪ ،‬مولانا قاڑی حقیظ الرحمن حسیی ‪،‬‬
‫م‬
‫م‬
‫الجاج حمد عرقان بقش پیدی ‪ ،‬تھاڑت منن تجرنک قکر ڑصا کے حیات حمد ڑنیر قادڑی ‪ ،‬مولانا علام‬
‫م‬
‫س‬
‫مصطق‬
‫ی ڑضوی ‪ ،‬یخ فرند پیاڑ اوڑ ان کے وابسنگان ‪ ،‬حضرت نیر ڑادہ حمد عیدالیاقی اسرقی اوڑ ان کے‬
‫م م‬
‫ل‬
‫م‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ب‬
‫پ‬
‫ن‬
‫گ‬
‫م‬
‫ی‬
‫ی‬
‫پ‬
‫وابسنگان ‪ ،‬حضرت مولانا لیاقت ڑصا اوڑ ولانا وت عا م اوڑ ان ے رند ن ‪ ،‬لا د ش ن‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫ڑصا اسلامک اکاد ی کے مولانا حمد ندبع العالم ڑضوی ‪ ،‬مولانا حمد عیدال ّٰلہ ‪ ،‬احسن العلوم جامعہ‬
‫م‬
‫سم‬
‫عوپتہ جات گام کے مولانا سید ابوالنیان ہا ی ‪ ،‬مولانا حمد عیدالمیان ‪ ،‬اس پرے لیا منن مولانا‬
‫م‬
‫ل م‬
‫اقیجاڑ ہراڑوی ‪ ،‬ڑاجا عیدا حمید ‪ ،‬حمد بسیم جان ‪ ،‬مولانا حمد بواڑ اسرقی ‪ ،‬ماڑی شش منن س ّٰیی‬

‫ڑضوی سوساپیی کے اڑکان ‪ ،‬مولانا مقیول احمد اسرقی ‪ ،‬ڑم نات وے منن الجاج میصوڑ ڑصا قادڑی ‪،‬‬
‫پ ح ف من م م‬
‫سقیع‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ح‬
‫پ‬
‫س‬
‫س‬
‫ی‬
‫دڑ ن یونی ا ربکا ن ولانا مد نانا ی قادڑی ‪ ،‬ا جاج احمد ڑ د ‪ ،‬ا جاج ا را یم ا مال‬
‫م‬
‫م‬
‫قادڑی ‪ ،‬پیوپر ہاسم میصوڑ ‪ ،‬ڑصا اکاد ی کے اڑکان ‪ ،‬مولانا اقیات قاسم ‪ ،‬کیت ناؤن منن مولانا حمد‬
‫ک س پ حض م مق م‬
‫مح‬
‫س‬
‫م‬
‫ل‬
‫ح‬
‫ک‬
‫عل‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ن‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ن ا رقی ‪ ،‬ری بوڑنا ن داڑا وم ری بوڑنا ے ر راہ رت ولانا یی مد ا ر راڑوی ‪،‬‬

‫م سم‬
‫مولاناجاقظ حمد ا عیل ہراڑوی اوڑ ان کے ڑققاء ‪ ،‬الجاج ڑاہد اپراہیم کرتم ‪ ،‬الجاج ابونکر کرتم ‪،‬‬

‫خوہابش پرگ منن مولانا اسلم سلیمان ‪ ،‬الجاج داکیر عیدال ّٰلہ میصوڑ ‪ ،‬امربکا منن الجاج اے لنیق‬
‫م‬
‫ق‬
‫ل‬
‫پیگ ‪ ،‬حیات علام قاڑوق ڑحمانی ‪ ،‬صاحت ڑادہ داکیر عیمان ع ی صدب ی ‪ ،‬حیات حمد پروپر اسرف ‪،‬‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫حمد سقیق مہر ‪ ،‬سید میوڑ ع ی ساہ تجاڑی ‪ ،‬حمد الیاس ‪ ،‬مولانا مقصود احمد قادڑی علاوہ اڑپن‬
‫ملاوی‪ ،‬اس ننن ‪ ،‬ڑی بوننن ‪ ،‬میجدہ عرت اماڑات ‪ ،‬کوپت وعیرہ سے احیات تے پیلے قون ‪ ،‬ای‬
‫ط ک عہ‬
‫حط ع‬
‫ظ‬
‫م‬
‫ق‬
‫ص‬
‫ل‬
‫ن‬
‫ی‬
‫م‬
‫عل‬
‫ب‬
‫میل اوڑ ح وط ے دڑ ب ے ن سالابہ بوم یت ا م ( تہ ا رحمہ ) یا تے جا تے کی لات‬
‫سے اگاہ کیا ۔ ال ّٰلہ کرتم احیات کی ان کاوسون کو سرف قیولیت سے بواڑے اوڑ ہماڑے قیلہ عالم‬
‫ع‬
‫حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کے دڑجات نلید فرماے ‪ ،‬امنن‬

‫بوننش کو کے مطابق ‪ 005‬ممالک کی قہرست منن خواندگی کے لجاط سے ناکسیان کا سماڑ ‪* 030‬‬

‫وپن دڑ حے منن ہے مگر کرت سن ( ندعیوانی اوڑ بگاڑ ) منن اس ملک کا سماڑ سر قہرست ممالک‬
‫ک‬
‫منن ہونا ہے ۔ ‪ 0388‬اڑت مالیت کی لوت ماڑ ‪ 28 ،‬ھرت کے فر صے اوڑ ‪ 23‬اڑت دالرڑ کے‬

‫جک‬
‫بقصان اس ملک کے مرابون ‪ ،‬سیاست کاڑون اوڑ مجاقطون کی ’’ تمانان کاڑکردگی ‘‘ ہنن ۔ اس‬
‫وطن منن ہر ناکسیانی ‪ 23 ،‬ہراڑ ڑو تے سے ڑاند کا مقروص ہے ۔ ات نک ‪ 24‬پرسون منن سے‬

‫گرستہ جاڑ پرسون کی ُڑوداد ڑنادہ تھیانک ہے۔ تہان عدل و ابصاف کا بہ اخوال ہے کہ ‪ 05‬پرس کا‬

‫کم سن لرکا اگر کیی ننیگ ُلوت لے بو ا سے اپیا سیگنن خرم گردانا جانا ہے کہ وہ لرکا ناپید سلاسل کردنا‬
‫جانا ہے مگر گیر کے گیدے اوڑ ڑہر نلے نانی سے سیری ‪ ،‬پرکاڑی کاست کر تے وا لے اوڑ فروحت کر تے‬
‫ہ سمح‬
‫خ کس‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫والون کو ’’ سرڑبش ‘‘ ت ی ضروڑی ت نن ی جانی ۔ ‪ 0088‬کے لگ تھگ افراد ’’ ود ی‬
‫پیگ مح‬
‫ل‬
‫گ‬
‫ع‬
‫ح‬
‫ک‬
‫‘‘ کر لنئے ہنن اوڑ ڑوڑابہ جا تے کنئے ماڑ د پئے جا تے ہنن ۔ د ی ھر اوڑ ی ادونات ے ھیاؤتے‬
‫حمل تھ‬
‫کھی تھ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫م‬
‫خ‬
‫ل‬
‫ن‬
‫ن‬
‫’’ ل ‘‘ ی وت ڑجا تے ن اوڑ دڑون ے ی بو ’’ نا رصا ‘‘ وڑ ے ن ۔ رم اوڑ‬
‫ہ‬
‫موت کے ہر ’’ سوداگر ‘‘ کو اعراڑ و اکرام سے بواڑا جانا ہے ‪ ،‬خرم جنیا سیگنن ہے ‪ ،‬اعراڑ اپیا ی ڑنادہ‬
‫مع‬
‫ہے ۔ مولی ڑقم کے واحیات ادا بہ کر تے پر سحت مواجدہ ہونا ہے مگر حطیر ڑقم ہرت کر تے پر بہ ’’‬
‫ہ‬
‫خرأت ‘‘ تہنن دکھانی جانی ۔ ہسنیالون سے تحے خوڑی ہوڑ ہے ہنن ‪ ،‬تے بوح ی نا علظ علاج کر کے‬
‫ک‬
‫مربص ماڑے جاڑ ہے ہنن ‪ ،‬ہسنیالون کا اسنعمال سدہ سامان ھلے عام موت پیخ ڑہا ہے ۔ ’’‬

‫ھ‬
‫م‬
‫ہلدی ‘‘ جا تے کنئے امراص کے لئے سقا ہے مگر اس پر ڑہر نلے کے ی کل کا ڑنگ لگاکر ا سے ت ی ڑہر‬
‫ہ‬
‫پیانا جاڑہا ہے ۔ ڑنگون کا ت ی ڑہر جا تے کنئے کھابون ‪ ،‬میھاپیون نلکہ تحون کی سوننش نک منن تے‬
‫م سمح‬
‫ھ‬
‫دڑبع اسنعمال کیا جاڑہا ہے ۔ خرات اوڑ ناقص اخرا کی ملاوت بو ساند ’’ لاڑ ی ‘‘ ی جانی ہے‬
‫ھ‬
‫۔ سدند ڑہرنلا دھوان حھوڑنی گاڑنان ت ی سرکون پر َدن دنانی ہنن ‪ ،‬بول پری قاڑم کو ’’ بعمت‬
‫ھ‬
‫‘‘ فراڑ د پئے وا لے اس کی علیظ پرپن ’’ قید ‘‘ ( عدا ) کو ت ی’’ حیات تحش ‘‘ گردا پئے ہنن ‪،‬‬
‫ل‬
‫ک‬
‫جل‬
‫ح‬
‫ق‬
‫م‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫تہاڑی اوڑ یم ( یم ) ن یماڑ اوڑ لا ر جان وَڑون کا وست لانا ت ت ع دے ڑہا ے ۔‬

‫کھی تھ ک‬
‫گ‬
‫ل م‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫تج ی سے جروم کر تے وا لے وول پیخ کم ڑنادہ کر تے کا ل ی ے ن اوڑ ر ر ن‬

‫جا تے کنیی اسیاء ڑوڑ جلا د پئے ہنن ۔۔۔ عدل و ابصاف معرڑ ححون کی تجالی کے لئے ضروڑ ملا ‪ ،‬لا‬
‫ہ‬
‫پیا افراد کے وابسنگان ڑو ڑ ہے ہنن ‪ ،‬کم ڑوڑ لرکیان خود سے ڑنادنی پر تے ات ُڑو ہوڑ ی ہنن ‪ ،‬جنیی (‬
‫م‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫ی‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ج‬
‫سکر ) اوڑ کھا تے ننئے کی میعدد اسیاء ی اوڑ د یرہ کر تے وا ے یرون پر ’’ ا یی ہاتھ ‘‘ ت نن‬
‫دالا گیا ‪ ،‬نی انی اے ‪ ،‬ناکسیان ڑنل وے ‪ ،‬ناکسیان اس پیل جنسے میعدد اداڑون کو دبوالتہ کرد پئے‬
‫سم‬
‫ہ‬
‫کو ’’خرم‘‘ ی تہنن حھا گیا ‪ ،‬اس پرپت کراتمر کی تہیات ‪ ،‬گاڑبون ‪ ،‬موپر سابکلون اوڑ مونانل‬
‫مسل‬
‫قون حھنئے جا تے کی سل واڑدات بو ڑوڑابہ ڑندگی کا لاڑمہ پیادی گیی ‪ ،‬ملک کے سرپراوڑدہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫لوگون ‪ ،‬ڑڑ اوڑ ڑوڑ ڑ ھئے والون کو ضرف معاقی ‪ ،‬ڑہانی ‪ ،‬پیاہ اوڑ فراڑ ی تہنن نلکہ مراعات اوڑ‬
‫ہ‬
‫اعراڑات سے بواڑا گیا ‪ ،‬ماہ ضیام منن ڑوڑابہ ی کراحی سہر جلیا ڑہا ‪ ،‬ہر دن لاسنن گرنی ڑہنن مگر‬

‫‪ 32‬ہراڑ سے ڑاند اہل کاڑ تماسانی پئے ڑ ہے ‪ ،‬کنئے سیاسی و عیر سیاسی گروہ تھی ّٰا ماقیا پن کر ڑندگیان‬
‫ہ سئ سئ گ‬
‫ی‬
‫پ‬
‫ھ‬
‫اجیرن کر تے ڑ ہے ‪ ،‬خوڑی داکا ‪ ،‬لوت ماڑ اوڑ خون ڑپری تے ن ے ب ے ر اجاڑے ‪ ،‬ل سے‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫تھرے ننیکر ی ’’ اعوا ‘‘ تہنن ہوے ‪ ،‬تحے اوڑ پرے ابسان ت ی اعوا ہوے ۔ حع ی دگرنان ‪،‬‬
‫سم ل‬
‫ھ کس‬
‫انابون کے حھو تے گوس واڑے اوڑ کرت سن ت ی ی ’’ معرڑ ڑکن ا ی ی ‘‘ کو نااہل تہنن‬
‫م‬
‫قع کس‬
‫ھ‬
‫کرسکے ؟ کا لے کربوت پر ت ی عرت افرانی ہونی ‪ ،‬کیا وا ی بہ ی اسلا ی ‪ ،‬ابسانی مملکت و‬
‫جک‬
‫ہ‬
‫ڑناست کے مرابون ‪ ،‬ناس نابون اوڑ سیاست کاڑون کی سیاہ کاڑنان ہونی جا ینن ؟ انک فرد کی‬

‫خراپیون کی ناس داڑی اوڑ ناس نانی منن مسعول بہ ست گرستہ جاڑ پرس منن ملک و ملت ‪ ،‬دپن‬

‫س‬
‫ھ‬
‫س‬
‫ی‬
‫ک‬
‫گ‬
‫ئ‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ک‬
‫س‬
‫و اننن ‪ ،‬تہدپت و اجلاق ی و نامال اوڑ ناڑاج ر ے ۔ ا ی وان ڑڑ ( و تے کی ہدبون ) ے‬
‫ھ‬
‫تجاڑی بہ سگان دپیا ‪ ،‬تمرود اوڑ فرعون کا اتجام تھول گئے ‪ ،‬فرعون کی عیرت انگیر لاس ت ی‬
‫م صق‬
‫سک‬
‫کس‬
‫اتہنن ی عیرت سے دوجاڑ بہ کر ی ۔۔۔ کسے وکیل کرپن کش سے ی ی جاہنن ؟؟؟‬

‫ہ‬
‫ھ ھ‬
‫کراحی والون کی سیرتم کوڑت سے امید پید ی ت ی کہ ان کی اسک سونی ہوگی ‪ ،‬ان کو ت یحئے *‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫والی ادپیون کا حھ مداوا ہوگا ‪ ،‬مگر بہ امید ت ی جاک ہوگیی ‪ ،‬جکومت کی ’’ ڑت ‘‘ سے ڑنادہ ہر‬
‫ک‬
‫ع‬
‫جک‬
‫س‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ہ‬
‫طرف دہست کی مل داڑی ہے ‪ ،‬مران ڑوڑ کرب ی بوت حھات کر معنست سے ل ڑ ے نن‬
‫ک‬
‫اوڑ سیاست کاڑون تے معاسرت کو اندوہ ناک نلکہ سرم ناک پیادنا ہے ۔ عیرت و حمیت حہان ھونا‬
‫م‬
‫م‬
‫سکہ ہوجاے وہان سخ اوڑ سجانی تے عیی ہوکر ڑہ جا تے ہنن ۔ اسلا ی حمہوڑبہ منن بعصیات اوڑ‬

‫جاہلیت کے اندھیرون تے دپرے حما لئے ہنن ‪ ،‬ا بسے ا بسے بول بو لے جاڑ ہے ہنن کہ بعقن اتھیا ہے ‪،‬‬
‫ق‬
‫ستہ ہونا ہے کہ مسلمان کہلا تے وا لے ابسا کہہ سکئے ہنن ‪ ،‬ابسان پر ست سے ڑنادہ ا ینن اس کی‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ڑنان ی کی وجہ سے انی ہنن ۔ اسی کراحی منن بہ ساتحہ ت ی گرڑا کہ قیرسیان منن قیرپن ھود کر‬
‫م‬
‫م‬
‫قل‬
‫ک‬
‫ع‬
‫ئ‬
‫ق‬
‫ک‬
‫پ‬
‫س‬
‫ج‬
‫ی‬
‫پ‬
‫ُمردہ خواننن سے ند ع ی کی گیی ۔ اس رم و وڑا رت ناک را د ے ے تجاے ی دنا ر اس‬
‫س‬
‫کی ب ہیر پر اکیقا کیا گیا ۔ ان پر پیت ‪ ،‬مونانل قون اوڑ نی وی حے نلر سے کی جا تے والی قجاسی اوڑ‬

‫عرنانی کی پرعیت تے جاہلیت ُاولی کو مات دی ہے ۔ مادڑ ندڑ اڑد اس نی وی کو ’’ ناپید ‘‘ کر تے کی‬
‫ھ‬
‫نات کی ت ی گیی بو ضرف بوہنن قیادت ڑو کئے کے لئے ‪ ،‬بوہنن ڑسالت ‪ ،‬بوہنن سربعت ‪ ،‬بوہنن‬

‫ہ ہ‬
‫ابساپیت ‪ ،‬بوہنن معاسرت کی گونا کونی ا میت ی تہنن۔ قے سن کے نام پر بوہنن عوڑت‬
‫م‬
‫ح‬
‫مرعوت ہے ‪ ،‬ت صیل ڑڑ کے لئے اجلاق ناحتہ اسیہاڑ حیوت ہنن ‪ ،‬ڑسواے ڑمابہ وپیا ملک کی ہر جیر‬
‫ہ م‬
‫مطلوت ہے مگر فران کرتم جلا تے پر احیجاج معیوت ہے ‪ ،‬کیا ت ی ی دنا کی اڑادی ہے ؟ ماڑپیگ سو‬
‫حھ‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫کے نام پر وڑپن کی تمام جدپن تھلا ی جاڑ ی نن ‪ ،‬ڑتمت پر عرنانی ے میاطر د ھا تے وے‬
‫’’ ڑنگ و بوڑ ‘‘ کی ناننن کی جانی ہنن ‪ ،‬ہر قجاسی کو ’’ ڑوبق اوڑ تہاڑ ‘‘ سے بعییر کیا جاڑہا ہے ۔‬

‫کس س‬
‫یگ ہ‬
‫م‬
‫اسلا ی مملکت منن حیا سوڑ تے عیرنی کی بہ کاڑ گراڑی ڑل ڑلہ ‪ ،‬سیلات ‪ ،‬دپ ی ی تہنن ی اب ی‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫م‬
‫سونا ی کو دعوت دے ڑ ی ہے خو ست حھ تہا لے جاے گا ۔۔۔‬

‫سم‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫گ‬
‫ملک کی ناڑلی منیت منن تجاس سے ڑاند ’’ سادات اوڑ نیرڑادون ‘‘ کا حوم پیک قال ھا یا ‪* ،‬‬
‫دپن و مدہت کے خوا لے سے ان ’’ مقدس ‘‘ ہسنیون سے سادہ لوج اہل اتمان تے جا تے کیا کیا‬
‫نک‬
‫م‬
‫ھ‬
‫امیدپن وابستہ کرلنن ‪ ،‬اہل س ّٰنت اہل حیت تے ت ی ’’ خوات ‘‘ د ھئے سروع کرد پئے ‪ ’’ ،‬ال‬
‫ک‬
‫مصطق‬
‫ل‬
‫پیی ‪ ،‬اولاد ع ی ‘‘ کا میاڑک دضف ڑ ھئے وا لے ان حہرون سے ملک منن بطام ی ( ﷺ ) کا‬
‫مک‬
‫ل ل‬
‫پ ہ‬
‫م مصطق‬
‫ی‬
‫ک‬
‫م‬
‫گ‬
‫م‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ف‬
‫ح‬
‫ق‬
‫ل بقاد اوڑ قام ی ( ﷺ ) کا ت ظ رپت ر مان یا جا تے گا ‪ ،‬ن جاڑ رس ی ن‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ق ک س‬
‫اتہون تے قسق و حوڑ کی حھ اب ی حماپت کی کہ جرات و مییر کے ناس نان ت ی سرمیدہ ہو گئے‬
‫لہ‬
‫ق‬
‫۔ان ناک ناڑ افراد تے بہ فرمان عالی سان ساند تہنن ُسیا کہ مدج س ی سے عرس ا ی لرڑ جانا ہے‬
‫ھ‬
‫ق‬
‫۔ کیا بہ ست اسی کے مرنکت تہنن ہو گئے ؟ گونا اس ’’ عاس ی ‘‘ منن عرت سادات ت ی گیی‬

‫سم‬
‫۔۔۔ دپیا تھر منن عہدہ و میصت کا حصول ات ہوس َڑڑ کی علامت نلکہ صماپت حھا جا تے لگا‬
‫مق‬
‫س ہ‬
‫ہے ۔ ہر سمت اب ی ی جیرپن ہنن ۔ ضومالتہ کے فراق بو تہروت تہنن تھر تے ‪ ،‬اپیی ی ی‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫ھیاؤنی سیاحت ی سے وہ َڑڑ جاصل کر تے ہنن ۔ ہاڑس پرندنگ کیا فراقی کی ’’ مہدت ‘‘ سکل‬

‫س‬
‫تہنن ؟ لونا کرب ی کے ققرے ان ’’ جادمنن قوم ‘‘ کے لئے کیون کہے جا تے ہنن ؟ نا اہل ‪ ،‬ندنام‬
‫ہ‬
‫ڑمابہ اوڑ کرپت افراد کی ی بقرڑی ان دمہ داڑون کو کیون تھانی ہے؟ حھوت ‪ ،‬میاققت اوڑ‬
‫ل گ ل من س کنس‬
‫ل کھس ہ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ی‬
‫وت وت ی و ’’ سیاست ‘‘ ون مان یا یا ؟ ا ودگی ن ا ودگی ی ؟ اتمان کی‬
‫ھ‬
‫خراڑت لقمہ خرام کو کت گواڑا کرے گی ؟ مگر مروجہ سیاست منن بو اپیی دپیی سہرت وا لے ت ی‬
‫ک‬
‫م‬
‫اس کے ڑنادہ ڑَ سیا سماڑ ہوڑ ہے ہنن ‪ ،‬بہ ’’ قو ی تماپیدے ‘‘ کیا گل ھلاڑ ہے ہنن ؟ کونی تھیر‬
‫ماڑے بو کونی نانگنن پرواے‪ ،‬لوت ماڑ منن گونا مقانلہ ہوڑہا ہے ۔ ان ست کی تہجان ’’ قابون‬
‫ملک‬
‫م‬
‫ہ‬
‫س‬
‫کیی ‘‘ ی کیون ہے ؟ بہ خوف اوڑ طلم کی علامت کیون ہو گئے ہنن ؟ قو ی سلامیی ‪ ،‬ی خود‬

‫ہ‬
‫م‬
‫حیاڑی اوڑ ابسانی حقوق کو ڑنادہ حظرہ ات ی سے ہوگیا ہے ۔ ڑہ ڑنی ان ’’ ڑہ پرون ‘‘ کا سنوہ و سعاڑ‬
‫م‬
‫ملک‬
‫ہوگیی ۔ انک ڑے مید دے وس کو کیا ڑوننن وہ بو عیر سلم اوڑ عیر ی تھا ‪ ،‬تہان بو خود ا پئے‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫اس سے ہنن ڑنادہ مہلک ناپت ہوڑ ہے ہنن ۔ صدڑ مملکت بو تہلے ی سے خو سہرت ڑ ھئے تھے‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫اس کے ناوخود اس عہدے کو ت ی ُڑسوا کر تے کے لئے اتہنن منیحت کیا گیا ‪ ،‬وڑپر ا ظم کے لئے بو‬
‫ھ‬
‫اعیراڑ خودھری ت ی کہہ ڑ ہے ہنن کہ وہ ’’ سجادہ بسنن اوڑ نیرڑادے ہنن ‘‘ ۔ بہ بو ُسیا ہے کہ‬

‫ھ‬
‫ملک‬
‫ی قابون منن اسینیاء ڑکھا گیا ہے اوڑ وہ ت ی عہدون کے لئے ‪ ،‬بہ کہ نیرڑادون اوڑ سجادہ بسنیون‬

‫کس‬
‫کے لئے ۔ اعیراڑ صاحت ی کا بست نا موڑونی میصت پیاکر کیا کہیا جاہ ڑ ہے ہنن ؟ اتہنن انداڑہ‬

‫ھ‬
‫ملک‬
‫ہ‬
‫ہوگا کہ میران سربعت منن بو ’’ بقوی ‘‘ ی معیاڑ ہے ۔ ی قابون منن ت ی ندڑم سلطان بود‬
‫ہ‬
‫کس‬
‫ہو تے سے ی ڑعاپت نا عرت کے خواہان کیا ا بسے ی کرداڑ کا مطاہرہ کر تے ہنن خوکہ دنکھا ُسیا‬
‫جاڑہا ہے ؟ ان کے جاندان کے ہر فرد پر خو الرام سا مئے اے ہنن کیا ’’ سادات عالی وقاڑ ‘‘ کو ڑپیا‬
‫نک‬
‫ک ہ‬
‫ھ‬
‫ن‬
‫ہنن ؟ اعیراڑ خودھری بو ’’ ننشہ وَڑ وکیل ‘‘ ہنن ‪ ،‬عدل و ابصاف سے ا ن جاڑ رنا ی ان کا‬
‫ک‬
‫یک‬
‫ڑوڑگاڑ ہے ‪ ،‬مگر ال ڑسول ہو تے کا اعراڑ بو حھ ڑنادہ ڑہد و بقوی اوڑ پ ی و ناک ناڑی کا بقاصا کرنا‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫ہے ۔ سجادہ بسنن ان سادات کے قول و قعل منن کیا اس کا مل دجل ت ی ہے ؟ انک سیاست‬
‫س‬
‫ض‬
‫ع‬
‫کاڑ تے بو وڑپر ا ظم کے لئے حقاڑت و ب حیک سے کہا کہ وہ دڑگاہون کی امدنی پر نلئے والا حص ہے‬

‫ل‬
‫جیرت ہے کہ وکیل صاحت ا سے قصیلت پیاڑ ہے ہنن اوڑ انک سیاسی ناڑنی کے سرپراہ ا سے نااہ ی‬
‫پیاڑ ہے ہنن ۔ اہل اتمان بو ’’ سادات ‘‘ کا اجیرام کرپن گے ۔ ہیرا اگر کی خر منن لت پت ہو بو‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ت ی ہیرا ی ڑہیا ہے ہان کی خر منن الودہ ہو تے کی وجہ سے اپیی ات و نات ھودپیا ہے ‪ ،‬کی خر سے‬

‫ہ‬
‫بکل کر دھل جاے بو اس کی حمک دمک و ی تہلے کی سی ہوگی ۔ بوبہ بو ابعام ہے مگر قوم کو عدلتہ‬
‫کھ ک‬
‫ھ‬
‫سک‬
‫م‬
‫ک‬
‫گ‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ی‬
‫س‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫ک‬
‫گ‬
‫سے ل ے کی ڑ م ھا تے وا ے بوبہ ے و ر یون ر ون ے ؟ اسلام نن بو ’’ سہید ‘‘‬
‫ع ع‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ن‬
‫ل‬
‫ن‬
‫م‬
‫کو ت ی فرص معاف تہنن ہونا ‪ ،‬سربعت و س ّٰنت کی ناپیدی کا مدہ ی ت وبہ ش کر تے وا ے‬
‫سجادہ بسنیان کیا ضرف پرا تے ندکرون اوڑ کیابون منن ڑہ گئے ؟‬

‫گھ ک س پ ک گھ من بظم‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫گ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ت‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫س‬
‫ر ے ر راہ و ر ن ند ی اوڑ تے ر یی ب ید ن ونی ‪ ،‬بگاڑ و وہ واڑا ن ر تے ‪* ،‬‬
‫گ‬
‫اپیی عرت اوڑ وضع داڑی کا اتہنن ناس اوڑ لجاط ہونا ہے ‪ ،‬ھر کے پرے ا پئے حھوبون کو سنیھا لئے‬
‫ک‬
‫اوڑ سنواڑ تے ہنن‪ ،‬اتہنن بگاڑ اوڑ خرانی سے تجا تے کے لئے ا پئے طوڑ طربق دڑست ڑ ھئے ہنن ‪،‬‬
‫ئ ئگ‬
‫پ تہی پینی مسنقی کس‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫س‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ا یی ون ‪ ،‬ون کا ل ی ند ن اوڑ ند رداڑ سے واب تہ ن و تے د ے ‪ ،‬ا ے ر کا‬

‫ک‬
‫ماخول احھا ڑ ھئے کے لئے کنئے جنن کر تے ہنن ۔۔۔ تھر کیا وجہ ہے کہ ملک کے پرے اوڑ سرپراہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫لیک‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ئ‬
‫ت‬
‫ہ‬
‫ملک کے لئے ابسا کرداڑ ادا تہنن کر تے ؟ ا سن کا خوأ ے ڑ یا ساند ا بسے ی پیا خ لانا ے ن کا‬
‫ہ‬
‫ملک و قوم کا سامیا ہے ۔ مروجہ حمہوڑپت تے منن دپن کی ناپیدی کی تجاے سنطان کی َتے ڑَ وی‬
‫عل‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫سکھادی ہے ‪ ،‬منن اپیی دپیی ‪ ،‬ی ‪ ،‬اجلاقی اوڑ معاسرنی اقداڑ و ڑوانات سے ڑنادہ ند یی‬
‫تھ‬
‫ہ گ ہ بعلیم‬
‫ہ‬
‫مرعوت ہوگیی ہے ‪ ،‬تہدپت و بقاقت ضرف عیرون کی بقالی و یی ے ‪،‬اپیا ی بصات ی م‬
‫ھ ک‬
‫سے حھن گیا ہے ‪ ،‬اپیی ڑنان ت ی ہم ھوڑ ہے ہنن ۔۔۔ کیا اس طرج ہم اپیی کونی سیاحت ناقی‬
‫ڑکھ سکنن گے ؟‬

‫معرت ‘‘ تے اڑادی بسوان کا سوڑ و عوعا کیا اوڑ معرت منن اس سیلات تے عوڑت کو ’’ *‬

‫عوڑت تہنن ڑ ہئے دنا ‪ ،‬اس سے اس کی عرت حھنن لی ‪ ،‬عوڑت سے خو سلوک اس معاسرے‬

‫ہ‬
‫منن ہوڑہا ہے وہ عیرت ناک ہے ۔ ‪ ،‬عوڑت کی ’’ اڑادی ‘‘ کی نات کر تے وا لے خود ی اس‬

‫عوڑت کی اڑادی کے جلاف قواننن وضع کرڑ ہے ہنن ‪ ،‬انک ’’ اڑاد عوڑت ‘‘ ’’ حجات و بقات‬

‫‘‘ تہنن تہن سکیی کیون کہ وہ مسلمان ہے ۔ ہان عنسانی ’’ َپن ‘‘ نا ڑاہتہ کو ساند بہ ’’ اڑادی ‘‘‬
‫منسر تہنن کہ وہ حجات کا اسنعمال پرک کردے۔ عوڑت کے ندن پر لیاس کم ہو نا بہ ہو ‪ ،‬بہ بو ڑَ وا‬
‫سم‬
‫حھا جاے مگر ’’ عیابہ ‘‘ اوڑ پرقع کو ناڑوا فراڑ دنا جاے ؟ عوڑت ناپید سرع ہو بو بہ ’’ اڑادی‬
‫‘‘ مسلمان عوڑت کو منسر تہنن ۔ بہ ُدہرا معیاڑ کیون ہے ؟‬

‫جک‬
‫سیاست کاڑون اوڑ مرابون تے فران ‪ ،‬اجادپت پیوی ‪ ،‬اقوال صجابہ اوڑ واقعات سیرت سے *‬
‫عل‬
‫مس‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ت جر کی ڑوس جا تے کیون اپیانی ہونی ہے ؟ ان کا دپیی ی اقلاس بو طاہر ے گر ملک نن وہ ’’‬
‫م ھ‬
‫دمہ داڑ ‘‘ سماڑ ہو تے ہنن ‪ ،‬تھر بہ عیر دمہ داڑابہ ناننن کیون ؟ مقت کے قیی ت ی ا بسے‬
‫مرجلون پر اسلام کے نام پر اپیی ’’ دکان داڑی ‘‘ حمکا تے سے اجنیات تہنن کر تے جالان کہ بون‬
‫م‬
‫وہ سحے مقنیون کو ندنام کر تے ہنن اوڑ عوام منن اسلا ی سعاپر اوڑ دپن کے بقدس کی بوہنن‬
‫ض‬
‫ھ‬
‫کروا تے کے مرنکت ہو تے ہنن۔ وہ خود ت ی تے وقعت ہو تے ہنن اوڑ سربعت و س ّٰنت کی ب حیک کا‬
‫تمس کس ک‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ی‬
‫ونال ت ی خود پر لنئے ہنن ۔ دپن منن مداجلت اوڑ دپن سے جر تے ی کو ی ’’ سرج ُڑو ‘‘‬
‫ص‬
‫ح‬
‫جک‬
‫ہ‬
‫تہنن کیا ۔ جاہ و مال کے خربص ان دپیا پرست مرابون اوڑ سیاست کاڑون کی یخ گرقت ت نن‬
‫ک ہ‬
‫س‬
‫ہونی بو وہ اپیی اب ی حیاپیون کو حھ پرا ی تہنن جا پئے نلکہ ان کا اعادہ کر تے ڑ ہئے ہنن۔‬
‫قمن پی ہ‬
‫م‬
‫سیکیوڑنی ‘‘ ( تحقظ ) کے نام پر دپیا تھر منن جکو ینن ا پئے عوام سے تھاڑی ڑ ن وڑ ڑ ی ’’ *‬

‫ہ‬
‫ہنن حت کہ بوڑی سیکیوڑنی فراہم تہنن کی جاڑ ی ۔ وطن عرپر منن بو اقواج ناکسیان کے مراکر پر‬

‫ہ‬
‫’’ حملے ‘‘ ہوے ‪ ،‬تجربہ کے کراحی مہران مرکر پر دہست گردی کی کاڑڑوانی ہونی ‪ ،‬کراحی ی منن‬

‫ھ‬
‫خوے کے انک ادے پر دھماکا ت ی کنیی کہاپیان سیا گیا ‪ ،‬دو ننن دن کے بعد بہ ست جیرپن ’’ پرانی‬
‫گ‬
‫گ‬
‫‘‘ ہو ینن اوڑ تھلادی ینن ۔ سیکیوڑنی ضرف ان لوگون کی ضروڑی ہے خو خود ملک و قوم کی‬
‫قع‬
‫سیکیوڑنی پر ماموڑ ہنن ۔ سول اوڑ قوحی عہدے داڑون اوڑ بولنش اقسرون کی وا ی سیکیوڑنی‬
‫جک‬
‫ہ‬
‫ہوڑ ی ہے ۔ عوام کا خون مران خوس ڑ ہے ہنن اوڑ ان کے حسم و جان کو دہست گرد بسابہ‬

‫ھ‬
‫ہ‬
‫پیاڑ ہے ہنن ۔ ڑوڑابہ ی لرکیون سے بولنش کی ڑنادنی کی جیرپن ت ی پیانی ہنن کہ اس ملک کے‬
‫ق‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ناسیدون کی عرت و اپرو کنیی حقوط ہے ۔ ننیکون سے دن دہاڑے پری ڑ منن لونی جاڑ ی ہنن ‪،‬‬

‫ل‬
‫ھ‬
‫خوڑون منن بولنش کے سامل ہو تے کی جیرپن ت ی میظر عام پر اننن ۔ ملک کی اکیرپت پر تج ی‬
‫ف ہم‬
‫ل‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ع‬
‫ئ‬
‫م‬
‫م‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ی‬
‫ی‬
‫پ‬
‫و گنش کی عدم را ی تے ڑوڑگاڑ ے دڑواڑے پید رد ے ۔ ر یاڑی اوڑ ڑاند ا یعاد دوا ن ون‬
‫جک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫پیانی اوڑ فروحت کی جاڑ ی ہنن ؟ اسکولون کا حون سے لرکیان کیون اعوا ہوڑ ی ہنن ؟ مرابون‬
‫ہ م‬
‫کا انک ی ’’ سن ‘‘ ہے اوڑ وہ ہے ’’ کرت سن ‘‘ ۔ تھیا خوڑ ابش منن کونی مقاہمت بہ کرسکئے‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫پر ہرنالنن کر کے اڑبون کا بقصان ی تہنن کر تے نلکہ جاصی انادی کو قا قے ت ی کروا تے ہنن ۔‬
‫ھ م‬
‫سھ‬
‫ہ‬
‫عیادت گاہنن ‪ ،‬احیماعات ‪ ،‬سادی گاہنن ی کیا تھرے ناڑاڑ ت ی حقوط تہنن ۔ ڑونا ی ی ڑو تے‬
‫سم‬
‫ہنن ۔ دڑون حملون کے جلاف ’’ ڑ ی مطاہرے ‘‘ بو ہو تے ہنن مگر کرت سن ‪ ،‬دہست گردی ‪،‬‬
‫گل م‬
‫ھ ک‬
‫م‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ج‬
‫م‬
‫ن‬
‫مہیگانی اوڑ تے حیانی کے جلاف سیاسی ساطر ت ی حھ تہنن کر تے ۔ ہر ی ے ن وت ے‬
‫سوداگر َدن دنا تے تھر تے ہنن ‪ ،‬لییرے حش خرأت و ہمت سے لوت ماڑ کرڑ ہے ہنن اس کے‬

‫ھ‬
‫ہ‬
‫مقانل ’’ مجاقطون ‘‘ منن ضرف بش نانی ی بظر انی ہے ۔ ڑَ پن خرڑ تے ت ی انک بوخوان کو‬

‫جک‬
‫حش طرج قیل کیا وہ ناقانل فراموس ساتحہ ہے ۔ مرابون تے اگر بہ ملک اس جال کو تہیجا تے کا‬
‫ہ‬
‫سودا کر ی لیا ہے کہ اس کی خوہری ’’ بوانانی ‘‘ اس سے حھنن لی جاے (العیاد نال ّٰلہ) بو وہ اس‬
‫م‬
‫کے لئے کونی کسر تہنن حھوڑ ڑ ہے مگر وہ تہنن جا پئے کہ تہود و ہیود اوڑ بصاڑی و حوس کی ڑصا‬
‫تہن ہ نن م‬
‫خ ہسن کیھ‬
‫کیھ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ن‬
‫م‬
‫خونی کے خواہان ی نا راد ن وے ‪ ،‬ان کی سیاہ وا ن ی ناڑ اوڑ ن و ن ‪ ،‬ی دنا‬
‫ھ‬
‫کس‬
‫ی جد نک سخ بول ڑہا ہے ‪ ،‬بوڑا سخ ت ی ات حھیانا اتہنن اسان تہنن ہوگا ۔ ملک کو لوت کر‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫ن‬
‫ج‬
‫گ‬
‫گ‬
‫ل‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ن‬
‫نیرون ملک ’’ ل ‘‘ رند تے وا ے ا پ ے ’’سرما تے ‘‘ یوا ن ے ‪ ،‬دپیا ن ع کی ونی بہ‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫اگ تہان ت ی اتہنن حھلساے گی ۔ ’’ ہر فرعو تے ڑا موسی‘‘۔ قدڑت سے م ی دھیل سامت‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫اعمال ی پرھانی ہے ۔ اقسوس کہ بوڑی ملت گیاہون کی خوگر ہونی جاڑ ی ہے (الا ماساء ال ّٰلہ )‬
‫۔‬
‫ہ جک‬
‫نلوحسیان کا ضوبہ ات ی مرابون اوڑ سیاست کاڑون کی سیاہ کاڑبون کی وجہ سے جل ڑہا ہے ۔ لاوے‬
‫نلئ ہن م‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ئ‬
‫جک‬
‫ک‬
‫م‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ج‬
‫م‬
‫پ‬
‫ننئے ہنن بو ا ے ن ۔ ر ون و ’’ گاڑد اف ا ر ‘‘ ش ر تے والی بہ و ت ا ے نامہ ا مال‬
‫ک ل‬
‫م‬
‫جک‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ج‬
‫ت‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ع‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ک‬
‫م‬
‫ق‬
‫ی‬
‫و ہر ے ون اپیا سیاہ رڑ ی ے ؟ ی صدا پیدا بہ ر ے بہ ران اس ملک ے وام سے یا‬
‫جک‬
‫م‬
‫جاہ ڑ ہے ہنن ؟ پیانا جانا ہے کہ سوپت ڑڑ لنید کے ننیکون منن ناکسیانی مرابون ‪ ،‬سول اوڑ اڑ ی‬
‫ک‬
‫س‬
‫پیوڑو کرب ی کی لوت ماڑ کے (‪ )207888788878887888‬اتھاننش ھرت ڑو تے حمع ہنن‬

‫ک‬
‫۔ میمو اس کنن دل بو بہ پیانا ہے کہ اس ملک کی سلامیی و خود محیاڑی سے ھیلئے وا لے تھی ع ری‬
‫نک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫تہنن خود ا پئے ی ہنن اوڑ ات خود ی اس پر میی دالیا اوڑ ا پئے عوام کی ا ھون منن دھول‬

‫کس‬
‫حھونکیا جا ہئے ہنن ۔ ’’ اتجنسنون ‘‘ کے نام سے جا تے کیا کیا ہوڑہا ہے ۔ حید افراد کے سوا حت ی کا‬
‫کس‬
‫ہ‬
‫تحقظ مطلوت ی تہنن بو ہر ی سے سیکیوڑنی کے نام پر اپیا تہت پیکش تھر کیون لیا جاڑہا ہے ؟‬

‫قع‬
‫اپیت اناد کے تھربوڑ انادی وا لے علا قے منن اسامہ پن لادن اگر ’’ وا ی ‘‘ ڑہیا ڑہا بو بہ کنسے‬
‫م‬
‫ک پیلیع‬
‫مک‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫پ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ق‬
‫ن وا ؟ ’’ و ت ا تے ر پیا تے ‘‘ کا حملہ د را تے والا وڑ ر داجلہ ڑاے وند ے ی ر ر ے‬
‫ناڑے منن لت کسانی کر کے حقابق سے حسم بوسی کیون کرڑہا ہے ؟ اگر ’’ سخ ‘‘ کہا تھا بو تھر‬

‫ہ‬
‫لاپروا ی کیون پرنی ؟ کیا اس ملک منن ضرف دہست گردون اوڑ لییرون کو تحقظ دنا جانا ہے ؟‬

‫فران کرتم اتھاکر انک ’’ ندبو داڑ سنعہ ‘‘ ضونانی وڑپر داجلہ تے خو سیم دھاے اس کا ونال کش پر‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ہے ؟ بہ میظر ت ی عحت تھا کہ ’’ فران اتھا تے ‘‘ پر اد ی ڑات منن ت ی ہر طرف اگ‬
‫ھ‬
‫تھرکادی گیی مگر ’’ فران جلا تے ‘‘ کے سا تحے پر ان منن سے انک ت ی واونلا کرنا بظر بہ انا ۔ وہ‬
‫ق م‬
‫ض‬
‫جک‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫مران خو ا پئے ی ملک کی اع ی عدلتہ کی ب حیک و تحقیر کر تے منن جر حسوس کر تے ہون ان‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫سے اننن و قابون کی ناس نانی تہنن ہوڑ ی بو وہ ملک و قوم کی کیا ڑ ھوالی کرپن گے ؟‬

‫کگ‬
‫گقیگ تھ‬
‫ہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ی‬
‫کہا جانا تھا کہ ’’ سرقاء ‘‘ ے رون ن ’’ ناڑاڑی ‘‘ و ی ن ونی ‪ ،‬رانی ‪ ،‬تھاند *‬
‫مس‬
‫کس‬
‫اوڑ جرے کے لقظ ان کے ہان اس طیقے کے لئے ی قدڑ حقاڑت سے کہے جا تے تھے خو َات ’’ قن‬

‫ل‬
‫کاڑ اوڑ اسیاڑڑ ‘‘ کہلا تے ہنن ۔ ق مون دڑامون منن کام کرنا ’’ تے ڑاہ ڑوی ‘‘ سماڑ ہونا تھا ۔‬
‫م‬
‫ص‬
‫ناج گا تے سے ڑعیت کو ُپری حیت کا ننیحہ کہا جانا تھا ۔ ڑومابوی اقسا تے جرت اجلاق تجرپرپن‬
‫ج‬
‫سماڑ ہو تے تھے ‪ ،‬اوڑ تے ہودہ بصوپرون وا لے خراند و ڑسانل ’’ نیھرے ‘‘ کہے جا تے ۔ حھونی‬
‫گ‬
‫م تہ‬
‫م‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ف‬
‫ف‬
‫ھ‬
‫س‬
‫پ‬
‫اس کرپن ’’ پیلے وڑن ‘‘ تے رون ن خ ر ان نابون و ’’ ر ودہ ‘‘ راڑ د ے ن اپیا ’’‬
‫گ‬
‫م‬
‫تھربوڑ ‘‘ کرداڑ ادا کیا ۔ سہرت اوڑ ندنا ی منن فرق کو حیم کیا جا تے لگا ۔ جاڑ حھہ ھنئے کے‬
‫گ گ‬
‫گ‬
‫م‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ق‬
‫س‬
‫ی‬
‫پ‬
‫دوڑا پئے کا نی وی حت ری کی و ون ے ساتھ ر و ت ے لگا بو ر ر ن ناج گانا بہ‬
‫ضرف تہیجا نلکہ ندپرانی نا تے لگا ۔ اجلاقی اقداڑ تہلے نامال ہوننن تھر منئے لگنن ۔ وہ لرکیان خو‬

‫پرون کے سا مئے ’’ تے حجات ‘‘ تہنن ہونی تھنن ’’ تے ناک ‘‘ ہو تے لگنن ‪ ،‬نی وی پید کرنا نا کروانا‬
‫گ‬
‫ہ قلمن سیھ‬
‫ھ ک لئ تھ‬
‫م‬
‫س‬
‫م‬
‫ک‬
‫س‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫گ‬
‫ھ‬
‫ر ے رے بوڑ ون ے ے ی ل و یا ۔ وی ی اڑ انا بو یدی ن ’’ ی ‘‘ ل‬
‫کن گ‬
‫نک‬
‫م‬
‫ت‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ننیھ کر د ھئے لگے ‪ ،‬دس ان ننیا تے مرند جدپن تھلانگئے منن مدد دی ‪ ،‬ے ل تے ر ر ن ر‬
‫گ‬
‫انک کو ھیر لیا ۔ وہ مسلمان خو ُپت اوڑ موڑنی دنکھ کر عیرت اتمانی سے خوس منن انا تھا ات‬
‫گ‬
‫مسل ل ک ع م‬
‫ل‬
‫س‬
‫ھ‬
‫ق‬
‫ی‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫م‬
‫میدڑ کی نیون اوڑ وڑپیون سے ونا ’’ مابوس ‘‘ و تے لگا ۔ مان ر یان یر م ’’ ن‬
‫سم‬
‫ح‬
‫م‬
‫ل‬
‫گ‬
‫ل‬
‫س‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫ل‬
‫کاڑون ‘‘ کا قنن ہونا اوڑ کہلانا ا پئے لئے کونی ’’ اعراڑ ‘‘ ے نن اوڑ مان ر ون تے یر‬
‫م‬
‫پ پئ ک‬
‫ل‬
‫س‬
‫م‬
‫پ‬
‫خ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ع‬
‫م اداکاڑاؤن کی یم رنان بصاو ر ا ے رون ‪ ،‬کاڑون ن او ران رنا اپیا بقا ر جانا ۔‬
‫ھ‬
‫مسلمان ت ی کقربہ اوڑ تے ہودہ گیت گن گیا تے لگے ۔ وطن کی کیا نات کی جاے ‪ ،‬مکہ مکرمہ اوڑ‬
‫کگ‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ت‬
‫ن‬
‫م‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫مدپتہ میوڑہ کے ہونلون اوڑ ناکسیاپیون ے رون ن ی بہ ست د ھا سیا جا تے لگا ۔ اس ے‬

‫نک ہ نک‬
‫گ‬
‫جلاف قول و قعل کو فرسودہ اوڑ ھنیا سوج کہا گیا اوڑ د ھئے ی د ھئے دپن ‪ ،‬مدہت ‪ ،‬اضول ‪،‬‬

‫اجلاق ‪ ،‬ڑوانات ‪ ،‬تہدپت و تمدن ‪ ،‬بقاقت ست کو بش بست دال دنا گیا ۔ مونانل ( سیل ‪ ،‬خوال‬
‫ھ‬
‫سھ‬
‫) قون تے اوڑ دلیر کردنا ۔ پرے ‪ ،‬تحے ‪ ،‬مرد ‪ ،‬عوڑت ی ی اس کے ناڑوا اسنعمال کے ت ی ’’ مربص‬
‫مس ک ک پی کح تہ‬
‫‘‘ ہو گئے ۔ تے حیانی ات ’’ قے سن ‘‘ ہوگیی ۔ مسلمابون تے کافرون ‪ ،‬ر ون ے وہاڑ ھ ا ی‬
‫ھ‬
‫کی طرج میا تے سروع کرد پئے ۔ ان کے طوڑ طربق اپیا تے کا سوق ت ی ڑ حئے لگا ۔ مسلمان‬
‫ک کیھ‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫لرکیون سے پرقعہ اوڑ جادڑ بو کیا ات دو پئے کا بوحھ ت ی تہنن اتھیا ‪ ،‬ندن د ھانا ی وت ونا‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫تھا ات مرعوت ہوگیا ۔ ڑاو تے اوڑ پیما تے حھ اپیی نیری سے ند لے کہ سرم کا لقظ ت ی سرما گیا‬
‫یگ م‬
‫م‬
‫ح‬
‫ل کس ل‬
‫گ‬
‫۔ تج ی تے ن ی تج ی گرانی ۔ دپ ی ھر تے ندن دھا نکئے پر حیوڑ کیا بو لرکیان حی مسوس کر ڑہ ینن‬
‫نک‬
‫پ خ تھ‬
‫ج‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ڑَ‬
‫۔ لود سیدنگ تے پیگ کیا بو ضرف نی وی د ے ے ے بو نی ا ش اوڑ ن ے ر کا رج ی‬
‫جک‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫گواڑا کرلیا ۔ مرابون اوڑ سیاست کاڑ تہلے ی ’’ عیرون ‘‘ سے مرعوت تھے ات عوام ت ی ’’‬
‫ک ن‬
‫س‬
‫اپیا ات ‘‘ ھو نیھے ۔ کیا ہماڑی کونی تہجان ناقی ہے ؟ ( سلام ان لوگون کو خو اب ی پید و نیر ‪،‬‬
‫ھ‬
‫نلاجیر اندھیون منن ت ی حیا داڑ ہنن اوڑ اپیی اپرو کی ناس داڑی کرڑ ہے ہنن ) ۔‬

‫م‬
‫ملک منن معاسرنی خراپیان تھیلا تے منن الیک پرانک ی دنا کا کنیا دجل ہے اس کا ندکرہ ہر *‬
‫م‬
‫ڑنان پر ہے ۔ ’’ َپیم ڑا ‘‘ ( ناکسیان الیک پرانک ی دنا ڑے گو لے ڑنی اتھاڑنی ) کو ضرف ملک‬
‫ض‬
‫پر مسلظ طیقے کی خواہسات کی نکیل سے عرص ہے ۔ جاوند عامدی ‪ ،‬میموبہ مرب ی ملک ‪ ،‬ناپر‬

‫خودھری جنسے دڑندہ دہن گسیاخون کو اسی اداڑے کی ’’ اسیر ناد ‘‘ جاصل ہے ۔ اس ملک منن‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫حیو نی وی ت ی تمانان پیت وڑک ہے ۔ اس پیت وڑک سے حہان حھ ’’ تھلے ‘‘ کام ہو تے ہنن‬
‫قل‬
‫م‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ک‬
‫ص‬
‫ع‬
‫وہان اس سے تہت معیرصہ کام ت ی ہوڑ ہے ہنن ۔ انک ی ہداپت کاڑ س یت ی وڑ ے بعاون‬
‫ک پ ق‬
‫م‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ج‬
‫سے حیو تے ’’ بول ‘‘ نا ی انک قلم پیانی ہے ‪ ،‬حیو نی وی اس و ا یی ربہ ش ش طا ر رڑہا ے‬
‫س‬
‫اوڑ اس کی ب ہیر منن ننش ننش ہے ۔ اس قلم منن ال ّٰلہ بعالی اوڑ اس کے فرسنون پر بہ ضرف‬

‫ھ‬
‫اعیراص کئے گئے ہنن نلکہ ان کی طرف عیوت و بقابص اوڑ علطیون کی بسنت ت ی کی گیی ہے ‪،‬‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ک‬
‫حھ مکا لمے کقربہ ہنن بو حھ سدند معیرصہ ‪ ،‬اس قلم منن انک حملہ بہ ہے ‪ ،‬لرکی ہیی ہے ‪ ’’ :‬کاس‬

‫سق‬
‫منن جدا ہونی بو منن ہر مرد سے انک تحہ حیوانی ‘‘ ۔ انک حملہ ہے کہ ‪ ’’ :‬ن ی کو ماڑ کر اتہون تے‬
‫جدا کی علظی کو بو تھیک کیا ‘‘ ۔ انک حملہ ہے کہ ‪ ’’ :‬ہمنن پیا جلا ہے کہ ہماڑی انک جیر فر س ےئ‬
‫ع لظ‬
‫ی سے ات کو دے گئے ہنن ‘‘ ۔ انک حملہ ہے ‪ ’’ :‬کیا ال ّٰلہ میان اوپر ننیھ کر بہ قیصلے کر تے‬
‫ہ‬
‫ہنن ‘‘ ۔ انک حملہ ہے ‪ ’’ :‬فرسنون کے ناس ہماڑا پیا علظ لکھا ہوگا کیون کہ تہان بو تہنن ت یخ ڑہا‬
‫ڑڑق ‘‘ ۔ انک حملہ بہ ہے کہ ‪ ’’:‬دپیا منن خو ا پئے لوگ تھوک سے مرڑ ہے ہنن وہ اس لئے‬

‫مرڑ ہے ہنن کہ جدا اپیی دمہ داڑنان بوڑی تہنن کرڑہا ۔ ‘‘ ( العیاد نال ّٰلہ ) ۔ ڑسول اکرم ﷺ کی‬
‫گ‬
‫تمس‬
‫ص‬
‫ح‬
‫مس‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ک‬
‫ّٰ‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ض‬
‫ج‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ج‬
‫سی‬
‫جدپت سربف کا ر اوڑ رت دنا دانا خ ش ڑ ی ا لہ تہ کی بو ن اوڑ د ے دے کا‬
‫بطوڑ ڑسوت اسنعمال دکھاکر گسیاحی و تے ادنی کی گیی ہے ۔ اسی پیت وڑک سے ’’ تمنیل حیات طنتہ‬
‫خ قل‬
‫م‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ل‬
‫م‬
‫گ‬
‫ک‬
‫ی‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫س‬
‫‘‘ کے نام سے و ن اوڑ دڑا ے ے کاست ے ے ن ان ن ڑ ول ا رم ﷺ کی والدہ‬

‫ع‬
‫ماجدہ ‪ ،‬ڑصا ی مان حضرت جلیمہ سعدبہ اوڑ بعص صجاپیات کے تے پردہ ’’ ڑول ‘‘ ( کرداڑ )‬

‫جا تے کن خواننن کی سکل منن دکھاے گئے ہنن ۔ صجابہ کرام کے ڑول منن مضجکہ جیر اوڑ‬

‫م‬
‫بوہنن امیر جلئے اوڑ گت ات دکھاے گئے ہنن جالان کہ تمنیل حیات طنتہ اوڑ دی مے سخ نا ی قلم‬
‫ھ‬
‫دکھا تے سے تہلے بہ دنک لے ڑے سن ت ی دکھانا جانا ہے کہ اس قلم منن ڑسول اکرم ﷺ اوڑ‬
‫جلقاء ڑاسدپن کے کرداڑون کے حہرے تہنن دکھاے کیون کہ ان کے حہرے دکھانا تے ادنی ہے ۔‬
‫ان سے کونی بوحھے کہ ان کے کرداڑ اس طرج دکھانا کیا تے ادنی اوڑ سدند گسیاحی تہنن اوڑ دنگر‬

‫صجابہ کرام کے ’’ حہرے ‘‘ دکھانا کنسے ڑَ وا ہوگیا ؟ اننیاے کرام اوڑ اصجات پیوی کے خوا لے سے‬
‫قل‬
‫تہود و بصاڑی تے اگر منن پیاننن اوڑ مسلمابون کی عیرت کو للکاڑا بو ان مسلمان کہلا تے والون‬
‫بس قل‬
‫نک‬
‫ک‬
‫ک‬
‫م‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫تے کیون ان کی ناپید کی ؟ ا ی ن پیا تے وا ے ‪ ،‬د ھا تے وا ے اوڑ د ے وا ے ش دڑ حے ے‬
‫م‬
‫جرم ہنن ساند اتہنن احساس تہنن ۔‬
‫گ‬
‫ک‬
‫ع‬
‫پرطاپیا اوڑ بوڑت منن جلاؤ ھیراؤ کے ُپربسدد حھ واقعات ڑوتما ہوے بو پرطابوی وڑپر ا ظم کو *‬
‫ھ‬
‫ت ی ’’ قنش نک ‘‘ پر اعیراص ہوا ۔ مسلمابون کے جلاف ساڑسنن ہون بو مسلمابون کا احیجاج‬
‫گ‬
‫م‬
‫عیر سلمون کو ناگواڑ گرڑنا ہے مگر اگ ا پئے ھر منن تھرک اتھے بو وہی ناننن خود ان ع ری‬
‫م ک‬
‫ک‬
‫مل‬
‫س مون کے موتھ سے بکلیی ہنن ۔ مسلمان ہنن بو علظ ‪ ،‬عیر سلم ہنن بو دڑست ۔ امربکامنن‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ناپن ا لے ون کے سا تحے تے خو اگ تھرکانی ہے وہ ت ھئے کا نام تہنن لے ڑ ی ۔ تہودی ضیھوپیون تے‬

‫ہ‬
‫ھ‬
‫امربکا کو ت ی اپیا سکاڑ پیا ڑکھا ہے ‪ ،‬ات ی کے اتما پر امربکا تے گیاہ لوگون کی موت کا سوداگر پیا ہوا ہے ‪،‬‬
‫بقرننن ناپت ڑہا ہے ‪ ،‬اوڑ ہر طرف ُڑسوا ہوڑہا ہے ۔ ا پئے ملک منن لوگون کی قلاج و تہیود پر خرج‬
‫ک‬
‫نک‬
‫کر تے کی تجاے امر ی جکومت دپیا تھر منن کست و خون کے میعدد مجاد ھو لے ہوے ہے ‪ ،‬اس‬

‫ہ‬
‫ہ‬
‫کی ساڑی بواناپیان اوڑ حطیر ڑقم ملکون کی پیا ی اوڑ لوگون کی موت پر خرج ہوڑ ی ہے اوڑ اس کے‬
‫نک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫حصے منن بقرت و حقاڑت ی پرھ ڑ ی ہے ۔ ابساپیت اوڑ حمہوڑپت کی نات کر تے والی امر ی‬
‫جکومت کی نالنسیان ابساپیت اوڑ حمہوڑپت کے سراسر جلاف ہنن ‪ ،‬دہست گردی کے جلاف حیگ‬

‫ہ‬
‫ہ‬
‫خود پری دہست گردی ناپت ہوڑ ی ہے اوڑ دہست گردون کی بعداد پرھاڑ ی ہے ۔ قا تخ عالم بو ’’‬
‫م‬
‫نک‬
‫حیت ‘‘ ہوسکیی ہے ۔ امر ی جکومت کی سدت بسیدی اوڑ اپیہا بسیدی خود ان کے ا پئے ملک کے‬
‫ہ‬
‫لئے حظرات منن اصاقہ کرڑ ی ہے ۔ وطن عرپر ناکسیان منن ‪ 23‬اڑت دالرڑ سے ڑاند ڑقم اوڑ‬

‫م‬
‫نک‬
‫جالنش ہراڑ کے لگ تھگ افراد کا بقصان اوڑ پرسون سے سنقل ندامیی امر ی جکومت کی علظ‬
‫م‬
‫نک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫نالنسنون کی حماپت ی کی وجہ سے ہوڑ ی ہے ۔ امر ی جکومت ا پئے انک جرم سہری ( ڑے مید‬
‫دے وس ) کو سدند خرم کے ناوخود تجا کر لے جانی ہے حت کہ ناکسیانی جکومت بو ا پئے تے گیاہ‬
‫سہربون کو دالرون کے عوص خود امربکا کے خوا لے کرنی ہے ۔‬

‫سم‬
‫ع‬
‫حیت سی نات ہے کہ حید افراد خود کو ’’ ہر طرج ‘‘ ملک و قوم کا ’’ مالک ‘‘ حھ لنئے ہنن اوڑ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ست حھ کر گرڑنا اپیا خق جا پئے ہنن ۔ بہ افراد خو حھوت ‪ ،‬میاققت ‪ ،‬فراد ‪ ،‬لوت ھسوت اوڑ‬

‫ک‬
‫کرت سن کے ’’ ھلاڑی ‘‘ کہلا تے ہنن کیا قومون کی ’’ بقدپر ‘‘ ان کے سیرد ہونی جا ہئے ؟‬
‫ق‬
‫ھ‬
‫دھیانی کا بہ عالم کہ حن کی میالنن بہ جربہ د پئے ہنن کہ ان کا کرداڑ ت ی تہنن اپیا تے ‪ ،‬وہ لوگ بو‬
‫ع لظ ھ‬
‫ع لظ‬
‫دڑا سی ی پر اپیا عہدہ حھوڑ د پئے ہنن مگر بہ پری سے پری ی پر ت ی ضرف اپیا کر تے ہنن کہ‬
‫س‬
‫اس حص کو ڑاہ سے ہیاد پئے ہنن خو ان کے جلاف ’’ پیوت ‘‘ ہوسکیا ہے ۔ ان کی ڑنان ‪ ،‬ان کی‬
‫مک‬
‫م‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫ق‬
‫خ‬
‫س‬
‫حقیقت اوڑ ان کا کرداڑ ان کی اصلیت طاہر کرنا ہے ۔ ان سے ل تجات ے ے وم و ود وحیا‬
‫ھ‬
‫ہوگا ‪ ،‬خود کو ندلیا ہوگا ۔ اقسوس کہ اس ملک کو کونی ت ی قانل دکر قیادت منسر تہنن ۔‬

‫تہت سوڑ ُسیا کہ کراحی منن میالی پرقیانی کام ہوے ۔ من مانی کرنا اگر پرقی ہے بو ابسا ضروڑ ہوا *‬
‫ل‬
‫ہے ۔ ہر ملک منن اندڑ ناس ‪ ،‬ہید اووَڑ پرج بظر ا تے ہنن یکن ابسا کہان ہونا ہے کہ کونی معقول‬
‫اوڑ میاست منیادل ڑاستہ د پئے بعیر ہراڑون کا ڑاستہ پید کردنا جاے ؟ بوڑت کے بہ بقال پیاننن کہ‬

‫کس‬
‫ھ‬
‫کس‬
‫وہان ی دبواڑ کو اوتجا پیجا ت ی ’’ من مانی ‘‘ سے کیا جاسکیا ہے ؟ بہ ناکسیان ہے ‪ ،‬تہان ی انک‬
‫ل‬
‫’’ صاحت ‘‘ کے لئے بو نلاپیگ ڑوکی اوڑ نالی جاسکیی ہے یکن ہراڑون کی پرواہ تہنن کی جانی ۔‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ل‬
‫تج ی کے سدند وول پیخ کی ناڑپن ڑہاب ی علاقون منن لگانا تہان کونی ’’ مسیلہ ‘‘ ی تہنن خواہ‬
‫ہ‬
‫سظ مسل‬
‫ح‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫خ‬
‫بسلنن کیون بہ میاپر ہون ۔ سرکون کے فرس کی خ ل او ی کی جاڑ ی ے ‪ ،‬واہ اس سے‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫مکابون کے فرس کنئے ی پیحے کیون بہ ہوجاننن ‪ ،‬اضول اوڑ صا بظے خود ڑ ھوا لے ی نامال‬
‫ک‬
‫کرڑ ہے ہنن ۔ حہان ہنن پربقک کے ڑا سئے اس سہر منن پید کر کے ’’ من مانی ‘‘ کی گیی ہے وہان‬

‫کنئے مسانل تے سر اتھانا ہے ‪ ،‬کسے پرواہ ہے ؟ کون بوحھیا ہے ؟ ان من ماپیون کی وجہ سے کنیا وقت‬

‫اوڑ ڑقم لوگون کا خرج ہونا ہے ؟ خوڑا ہے اس پرقیانی کام سے ہست ڑا ہے پئے ہوے ہنن ‪ ،‬کنئے‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫مع‬
‫جاد تے مول ہو گئے ہنن مگر اس ملک منن ابسانی جان ی ست سے اڑڑان جیر ہے تے یگم‬
‫ظ‬
‫پرے قک ‪ ،‬گیدگی ‪ ،‬ندب می ۔۔۔ الامان الحقیظ ۔ ڑے دبو کیت کے دڑاؤڑ ‪ 24‬گھنئے دبونی کے ل ےئ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ڑ ھے جا تے ہنن ‪ ،‬کیا بہ ابسانی جابون سے ھیلیا تہنن ؟ پیا ڑکسا ہر کش و ناکش کو ناپیا جاڑہا ہے ‪ ،‬کیا‬
‫سم‬
‫گہ‬
‫اتہنن دڑاؤنگ کی کونی پرپیت ‪ ،‬پرے قک قواننن سے ا ی فراہم کرنا ضروڑی حھا گیا ؟ اناڑبون‬
‫س‬
‫ہ‬
‫تے مسکلات اوڑ پربساپیون ی منن اصاقہ کیا ہے ۔ ڑہاب ی علاقون منن سہربون کی مرصی کے بعیر‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫مک‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫مرسیل اسنعمال کی اجاڑت دی جاڑ ی ہے ۔ ڑسوت ‪ ،‬وھوبش ‪ ،‬د ی ی طاقت و یی ے ‪،‬‬
‫ع‬
‫قابون کو صدڑ اوڑ وڑپر ا ظم تہنن ما پئے بو کونی اوڑ کیا ما تے گا ؟‬

‫ہ‬
‫نا اجنیاڑ عوڑت تہان و ی ہے خو سرعام نا حے ‪ ،‬دپن و مدہت اوڑ سرم و حیا سے اڑاد ہو ‪ ،‬جلیا *‬
‫مس‬
‫تھرنا ’’ اسیہاڑ ‘‘ ہو ۔ ناجاقی اوڑ طلاقون کے پر ھئے ہوے پیاست ‪ ،‬نیرات سے حہرے خ کر تے کے‬
‫واقعات ‪ ،‬ڑنادنی کی سرم ناک جیرپن ’’ تحقظ بسوان قابون ‘‘ کا مداق اڑانی ہنن ۔ مسلمان‬

‫کہلا تے وا لے حت فران و س ّٰنت سے ُڑوگردانی کرپن گے بو کونی تھلانی تہنن ناننن گے ۔ وہ ’’‬
‫سم‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫صجاقی اوڑ اپیکر ‘‘ خو لقظ ’’ مولوی ‘‘ کی بوہنن اپیی بسکنن کے لئے ضروڑی ھئے نن وہ کیا جا نن‬
‫م‬
‫کہ ’’ مولوی ‘‘ ہونا کنئے اعراڑ کی نات ہے ۔ بہ کونی ’’ پرو قے سن ‘‘ تہنن ‪ ،‬مولوی کے عیی ہنن‬

‫’’ مولا والا ‘‘ ۔ ال ّٰلہ والا ہونا ہر کش و ناکش کا حصہ تہنن ۔ کہا جاسکیا ہے کہ ان لوگون کو اپیی‬
‫ہ‬
‫خرأ ت ساند ان لوگون تے دی ہے خو مولوی تہنن ہنن ‪ ،‬ضرف کہلا تے ہنن ۔ منن بو بہ ناوڑ‬
‫کرانا ہے کہ سحے مولوی کی اہاپت نلاستہ دپن کی اہاپت ہے اوڑ بہ کقر نک تہیجادپیی ہے ۔ اجنیاط‬

‫نلاستہ تہیر اوڑ مقید ہے ۔ انک داکیر عامر لیاقت حسنن ہنن خو ا پئے انداڑ منن اس خوا لے سے‬
‫کیھ ک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ی ھ ہہ د پ ے ن وڑبہ ر حے ل سے لا روا ی اوڑ د یانی کا مطا رہ وڑہا ے ۔‬

‫ک‬
‫ک‬
‫گرستہ دو ننن پرسون منن حھ علماے کرام تے اپیی بواناپیان حھ ا بسے مسانل منن گیوانی ہنن *‬
‫گ‬
‫ع ع‬
‫ظ‬
‫ح‬
‫ت‬
‫ی‬
‫حش سے اقیراق و اننساڑ پرھا ہے ۔ خو موقف حضرت سیدنا دانا خ ش ‪ ،‬سیدنا وت ا م ‪ ،‬سیدنا‬
‫ل‬
‫ع‬
‫خواجہ عرپت بواڑ ڑصی ال ّٰلہ یہم منن میقفہ اوڑ عیر منیاڑع ڑہا وہ اج کیون ا حھاؤ کا سنت ہوگیا‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ح‬
‫ق‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ہے ؟ کیا اج کے حھ سادات کا ان مدکوڑہ ہسنیون سے کونی مواڑبہ ہوسکیا ہے ؟ اج ’’ ڑندہ ا ق‬
‫جس‬
‫‘‘ ن ی کیت تے دپن و ملت کی کیا جدمت کی ہے ؟ حسے ا پئے ’’ علم ‘‘ کا ڑعم ہے وہ اس سے کونی‬
‫ہ‬
‫قنتہ ی کیون حیم دے ڑہا ہے ؟ سیدنا ابونکر صدبق ڑصی ال ّٰلہ عتہ کی اقصلیت اوڑ حضرت امیر‬

‫کس‬
‫معاوبہ کی صجاپیت کے پیوت کے لئے اہل اتمان کو اج کے ان علماء سے ی دلیل کی ضروڑت تہنن‬
‫م‬
‫ل‬
‫۔ جلیفہ ڑابع مولاے کاپیات سیدنا ع ی اوڑ اہل پیت پیوت سے کمال حیت اوڑ تمام اصجات پیوی‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫ڑصی ال ّٰلہ یہم کا ادت ی اہل اتمان کا سنوہ و سعاڑڑ ہے گا ۔‬

‫م‬
‫س‬
‫اہل س ّٰنت و حماعت کو میجد و یظم کر تے کی تجاے بہ علماء اپیی اب ی ’’ کاڑگراڑبون ‘‘ سے اتہنن‬
‫عل‬
‫اپیون ہی سے میصادم کرواڑ ہے ہنن ‪ ،‬کنیا احھا ہو کہ بہ علماء اپیا می میصیی وقاڑ ننش بظر ڑکھ ےئ‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ہوے اپیی دمہ داڑی کا احساس کرپن اوڑ ملت کو یخ عقاند پر تحتہ کرپن اوڑ ندعقیدگی کی نلعاڑ سے‬
‫تجاننن ۔‬

‫گرستہ پرس سالابہ مجلہ سابع ہو تے کے بعد حضرت حطیت ملت علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی *‬

‫ماہ میی ‪2800‬ء منن دس ڑوڑہ دوڑے پر امربکا بسربف لے گئے ۔ ہانی بواپیت کے ڑولاپیا منن‬
‫ع‬
‫ُ‬
‫مسجد گل ڑاڑ جنیت کی ب میر کے لئے قید ڑے ڑنگ احیماع میعقد ہوا ۔ ممیاڑ اسکالر داکیر عامر‬
‫س‬
‫لیاقت حسنن تے اس پروگرام منن حصوصی سرکت کی ۔ سقر سے واب ی پر اتہون تے ا پئے پروگرام ’’‬
‫َ‬
‫ل‬
‫م‬
‫ک‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫پ‬
‫م‬
‫ن‬
‫پ‬
‫عالم اوڑ عا م ‘‘ ن ا ے ساہدات و نا رات پیان ے ۔‬

‫ہق ک م‬
‫ح‬
‫ل‬
‫گ‬
‫ئ‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ی‬
‫ماہ میی کے اخر منن حضرت حطیت ملت انک ئے ے ضر دوڑے ر رطاپیا بسربف ے ے حہان‬
‫میگ‬
‫ھ‬
‫ح‬
‫م‬
‫ل‬
‫س‬
‫ت‬
‫اتہون تے پر م ‪ ،‬نلیک پرن ‪ ،‬ما یر اوڑ بو نن نن احیماعات سے حطات کیا ۔‬

‫م‬
‫ح‬
‫ح‬
‫ل‬
‫گ‬
‫ت‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫پ‬
‫ی‬
‫س‬
‫ف‬
‫ض‬
‫ب‬
‫ماہ سیمیر کے اخر منن وہ ر ی دوڑے ر یونی ا ربقا ربف ے ے حہان ات ون تے حیات‬
‫جاحی اپراہیم کرتم مرخوم کی بونی اوڑ حیات الجاج ہاڑون ناڑ کے فرڑند کی سادی منن سرکت کی‬
‫ھ‬
‫اوڑ احیماعات سے حطات ت ی کیا ۔ مدپتہ میوڑہ سے پییرہ حضرت قطت مدپتہ علامہ صاحت ڑادہ‬
‫ھ‬
‫داکیر ڑضوان قصل الرحمن ت ی ان بقرپیات منن سرنک ہوے ۔‬

‫ماہ بومیر منن حطیت ملت تے ا نک مرپتہ تھر حیونی افربقا کا سقر کیا اوڑ داڑالعلوم پری بوڑنا کے‬

‫َ‬
‫سالابہ جلسے منن سرکت کی ۔ اسیاد العلماء حضرت مولانا سید حسنن الدپن ساہ ناکسیان سے اوڑ‬
‫م‬
‫پرطاپیا سے مولانا قاڑی جلیل احمد حقانی اوڑ مولانا قاڑی حمد سعیت حسیی بسربف لاے ۔ کیت‬
‫م‬
‫م‬
‫م ع‬
‫ناؤن ‪ ،‬دڑپن اوڑ پری بوڑنا منن قیی ا ظم حضرت مولانا حمد اکیر ہراڑوی اوڑ مولانا جاقظ حمد‬
‫سم‬
‫ا عیل ہراڑوی کے ڑپر اہیمام داڑالعلوم پری بوڑنا کے احیماعات ہوے ۔‬

‫م‬
‫ع‬
‫ماہ جرم کے اخر منن حضرت حطیت ملت تے ڑناڑت و مرہ کی سعادت جاصل کی۔‬
‫ل‬
‫َ‬
‫ڑاول پیدی منن اسیاد العلماء حضرت مولانا ابوا جیر نیر سید حسنن الدپن ساہ صاحت اوڑ ان *‬
‫قت کے اجا ظے ‪x40‬کے پرادڑان دی سان تے ‪ 38‬پرس تہلے سیری میدی کے علا قے منن ‪58‬‬
‫م‬
‫مس‬
‫ح‬
‫ن‬
‫پ‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ق‬
‫ک‬
‫ض‬
‫م‬
‫والی انک ر جد سے د یی جد ت کا اعاڑ یا تھا ۔ ب صلہ بعالی ان کی جدمات ناڑ اوڑ و ن ۔‬

‫ھ‬
‫ل گ‬
‫سیری میدی منن ت ی اس عماڑت کی بوسنع ہونی اوڑ میعدد پیی عماڑات ننیی ج ی ینن ۔‬
‫ع‬
‫خواننن کے لئے ’’ ہمک ‘‘ کے علا قے منن وسنع ڑ قئے پر جامعہ کی ب میر کی گیی ہے ۔ ماڑج‬

‫ل‬
‫‪2802‬ء منن ’’ جامعہ ڑضوبہ ضیاء العلوم ‘‘ کے حسن ڑڑپن ( گولدن خون ی ) کے خوا لے سے‬
‫بقرپیات بسکر کا ابعقاد کیا گیا ۔ نا تخ ڑوڑ منن گیاڑہ بقرپیات ہوننن ۔ حیونی افربقا ‪ ،‬ملاے سیا ‪،‬‬

‫ماڑی شش ‪ ،‬پرطاپیا ‪ ،‬اس پرے لیا میجدہ عرت عماڑات اوڑ کیی ممالک سے علما و مسا تخ اوڑ‬

‫ح‬
‫ڑعماء کی جاصی بعداد تے ان بقرپیات منن سرکت کی ۔ اس جامعہ سے ت صیل علم کر تے وا لے‬
‫م‬
‫م ع‬
‫ھ‬
‫سیکرون علما ( طلتہ و طالیات ) ت ی ا پئے ا پئے علاقون سے اے ۔ قیی ا ظم پرطاپیا مولانا حمد‬
‫ل‬
‫م سم‬
‫گل ڑحمن صاحت ‪ ،‬عاڑی ملت حضرت مولانا سید حمد ہا ی میان اسرقی ‪ ،‬پییرہ اع ی حضرت مولانا‬
‫م ع‬
‫بوضیف ڑصا جان پرنلوی ‪ ،‬حطیت ملت حضرت علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی ‪ ،‬قیی ا ظم حیونی‬
‫م‬
‫م سم‬
‫افربقا حضرت مولانا حمد اکیر ہراڑوی اوڑ مولانا جاقظ حمد ا عیل ہراڑوی تے حصوصی سرکت کی‬
‫م‬
‫م م‬
‫ھ‬
‫۔ قیی حمد اکیر ہراڑوی صاحت کی اہلتہ جیرمہ ت ی خواننن کے احیماع منن کلیدی حطات کے لئے‬
‫ھ‬
‫سرنک ہوننن ۔ ناکسیان تھر سے ممیاڑ علماے کرام اوڑ عماندپن تے ت ی سرکت کی ۔ نا تخ ڑوڑہ‬
‫نکمی تہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ج‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫تمام بقرپیات تجیر و خونی نابہ ل کو نن ان بقرپیات نن اپیطام و ابضرام اوڑ مابون کی‬

‫ندپرانی کا ہر طرج حیال ڑکھا گیا ۔ نیرون ملک سے ا تے وا لے ننش پر افراد تے ا پئے اس سقر منن‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫خرمنن سربقنن ت ی جاضری دی اوڑ ڑناڑت و مرہ کی سعادت جاصل کی ۔‬

‫م‬
‫ھ‬
‫اس سال ت ی ماہ ڑحت ‪ ،‬ماہ سعیان ‪ ،‬ماہ ڑمصان ‪ ،‬ماہ جرم اوڑ ماہ ڑپیع الیوڑ منن نی نی وی *‬
‫‪ ،‬ون نی وی ‪ ،‬اج نی وی ‪ ،‬اے اڑ وانی دی حی نل ‪ ،‬حیو نی وی ‪ ،‬سماء نی وی ‪ ،‬انکش پربش نی‬

‫وی ‪ ،‬سی اپن نی سی ‪ ،‬وقت نی وی ‪ ،‬ان دس نی وی ‪ ،‬میت ڑو وَن نی وی ‪ ،‬اے نی وی ‪ ،‬کیو نی‬
‫وی سے حضرت حطیت ملت علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی کے میعدد پروگرام پیلے کاست ہوے اوڑ‬
‫تہت بسید کئے گئے ۔‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫حضرت صاحت ڑادہ نیر سید حمد ننیل الرحمن حسیی ‪ ،‬حضرت مولانا حمد سعادت ع ی قصوڑی ‪* ،‬‬
‫م‬
‫لم‬
‫ص‬
‫طق‬
‫ق‬
‫م‬
‫ص‬
‫ی‬
‫ج‬
‫الجاج مولانا عطاء ا ی بوڑی اف ل اناد ‪ ،‬حیات طاڑق اقیال ع والدہ یرمہ ( امربکا )‬
‫م‬
‫الجاج حی اتم انی میصوڑ (حیونی افربقا ) ‪ ،‬حیات پیوپر ہاسم میصوڑ( حیونی افربقا ) ‪ ،‬حیات حمد سمیر‬
‫م‬
‫س م‬
‫پیی ( حیونی افربقا ) ‪ ،‬الجاج یخ حمد سروڑ (پرطاپیا ) ‪ ،‬مولانا قاڑی حمد حقیظ ( لاہوڑ ) ‪ ،‬الجاج نانا‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫حمد ڑناص ڑحمانی ( اوکاڑا ) ‪ ،‬الجاج سید اسد ع ی ساہ تجاڑی (بساوڑ ) ‪ ،‬حیات عیدالرسید یمن (‬
‫م م‬
‫م ق‬
‫ح‬
‫س‬
‫ل‬
‫ک‬
‫م‬
‫ح‬
‫امربکا ) ‪ ،‬مولانا حمد ن اسرقی ‪ ،‬ا جاج سیاق اوڑ ان ے ڑققاء ( یونی افربقا ) ‪ ،‬حضرت ولانا یخ‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫حمد ناڑو ڑنی ( سیی نلوحسیان) ‪ ،‬مولانا حمد وڑپر القادڑی ( نلوحسیان ) ‪ ،‬الجاج خودھری حمد اقصل‬
‫م‬
‫ل‬
‫( لاہوڑ ) ‪،‬حیات عیدالرؤف یمن ( امربکا ) اوڑ الجاج مرڑا عیدا مقصود مدنی ( سعودی عرت) ‪،‬‬
‫ع‬
‫کراحی ناکسیان اے ‪ ،‬ان ست تے حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کے مرقد میاڑک پر جاضری دی‬
‫اوڑ حضرت حطیت ملت سے ملاقات کی ۔‬

‫ع‬
‫ق‬
‫ہماڑے حضرت قیلہ عالم حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی ڑہابش گاہ کے لئے ساڑع یصل سے *‬
‫ہ‬
‫امد و ڑقت کا ڑاستہ پید کئے حھ پرس ہوڑ ہے ہنن ‪ ،‬منن تہنن معلوم کہ منیادل معقول ڑاستہ‬

‫د تے بعیر انک پری انادی کا ڑاستہ پید کردپیا کون سا قابونی ‪ ،‬اجلاقی ‪ ،‬ابصاف اوڑ کون سا ’’ پرقیانی‬
‫ق‬
‫کام ‘‘ ہے ؟ ناڑس اوڑ وی انی نی موومیت منن اس علا قے کے مکنیون کے لئے ساڑع یصل کے اڑ‬
‫ھ م‬
‫ناڑ جا تے کی کونی ڑاہ تہنن ڑہ جانی ۔ سید ی سلم سوساپیی کا خوڑاہا پید کر تے والون تے اس‬
‫مسل‬
‫علا قے کے لوگون کے لئے سل اڑاڑ کا خو سامان کیا ہے اس کا ’’ بوبش ‘‘ لنئے والا کونی تہنن ۔‬

‫ہراڑون لوگون کے ڑا سئے پید کر کے سگیل فری کوڑے دوڑ پیا تے وا لے کیون تھول جا تے ہنن کہ‬
‫نلق م‬
‫مسل‬
‫وہ جا تے کنئے لوگون کی خق ی کے جرم تھہر تے ہنن اوڑ ان کے لئے سل ادپت کا سامان‬
‫کر تے ہنن ۔‬

‫م‬
‫جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت منن حیف اتجنییر حیات مرڑا حمد بوند اوڑ اڑکی پیکت حیات اڑساد *‬
‫م‬
‫م‬
‫ع‬
‫حسنن صاحت تے حیات حمد حقیظ اوڑ ان کے فرڑند کامران صاحت کے بعاون سے ب میرانی کام حمد‬
‫م‬
‫بوبش بگالا تھیکے داڑ کے دڑ بعے جاڑی ڑکھا۔ تھیکے داڑ حمد بوبش عیر ضروڑی ناجیر کرنا اپیا فرص‬
‫میص سم‬
‫ح‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫س‬
‫ُ‬
‫ت‬
‫ش‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ج‬
‫ح‬
‫یی ھئے نن ۔ اڑکی پیکت اوڑ ات نییر ی ا پئے ملے کی یی کی سکاپت کر تے نن ۔ ت مدہ‬

‫ک‬
‫ع‬
‫بعالی ب میرانی کام حضرت حطیت ملت علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی جاڑی ڑ ھے ہوے ہنن ۔‬
‫مک‬
‫ع‬
‫احیات دعا فرماننن کہ جلد ب میری کام مل ہوجاے ۔‬
‫ع‬
‫وپن سالابہ عرس میاڑک سے قیل قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے مراڑ ‪* 27‬‬
‫م‬
‫ظ‬
‫میاڑک کے گنید منن سیمنیت سے حطا ی کے کام کا اعاڑ ہوا تھا ‪ ،‬کاڑی گری کر تے وا لے حمد جاوند‬
‫مک‬
‫ل‬
‫ناگوڑی کا حیال تھا کہ وہ اس کام کو ننن ماہ منن مل کر لے گا یکن اس کا انداڑہ دڑست تہنن‬

‫ہ‬
‫تھا ‪ ،‬ناجال بہ کام جاڑی ہے ۔ بوقع کی جاڑ ی ہے کہ ‪ 20‬وپن سالابہ عرس سربف سے قیل بہ کام‬
‫مک‬
‫ہ کس‬
‫پ پ کہ ہ بس ظ‬
‫س‬
‫م‬
‫ہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ل وجاے گا ۔ تمام ڑا ر ن کا یا ے کہ ا ی حطا ی ی نیت سے ساند ی ی اوڑ راڑ‬

‫ظ‬
‫سربف منن ہونی ہوگی ۔ ماہ اپرنل ‪2802‬ء منن اس حطا ی پر ڑنگ و ڑوعن کے کام کا اعاڑ‬
‫مک‬
‫کردنا گیا ہے ‪ ،‬ڑنگ ساڑ مسرف کا کہیا ہے کہ وہ انک پرس منن بہ کام مل کر لے گا ‪ ،‬ال ّٰلہ بعالی جل‬
‫سابہ سے دعا ہے کہ وہ اس مراڑ سربف کو مرکر ابواڑ و پرکات پیاے ۔‬

‫ُ‬
‫ہر سال عید میلاد النیی ﷺ کے موقع پر ناڑہ ڑپیع الیوڑ کو جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت منن اقطاڑی *‬
‫ھ‬
‫کا اہیمام ت ی احیات کی طرف سے کیا جانا ہے حش منن ہراڑون افراد سرکت کر تے ہنن ۔ کراحی‬

‫ھ‬
‫ک‬
‫کے مجدوس جالات کے ننش بظر مسجد کے اندڑ اوڑ اطراف سیکیوڑنی یمرے ت ی لگاے گئے ہنن اوڑ‬

‫کوشش کی جانی ہے کہ مسجد منن ا تے وا لے تماڑبون کو ہر طرج سہولت اوڑ اسانی ڑ ہے ۔ مسجد‬

‫کے اطراف کی دبواڑ کا انک حصہ بقصلہ بعالی مسجد پیوی سربف کے بقسے کے مطابق پیالیا گیا ہے ‪ ،‬ان‬
‫مک‬
‫ع‬
‫ع ھ ھ‬
‫ھ‬
‫ساء ال ّٰلہ ناقی حصے کی ب میر کا کام ت ی جلد مل کیا جاے گا ۔ مسجد کے منیاڑ کی ب میر ت ی ات ی‬
‫مک‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫نا مل ہے ۔ ات سے اسیدعا ہے کہ ب میر منن بعاون فرماننن اوڑ دعا ت ی فرماننن کہ جلد بہ کام‬
‫نکمی ک تہ‬
‫ح‬
‫نابہ ل و ی ے ۔‬
‫نادگاڑ اسلاف حضرت علامہ نیرڑادہ اقیال احمدقاڑوقی ( مدپر ماہ نامہ حہان ڑصا ‪ ،‬لاہوڑ ) بقتہ *‬
‫م‬
‫مصطق‬
‫السلف حضرت مولانا ابو داؤد الجاج حمد صادق ( ماہ نامہ ڑصاے ی ‪ ،‬گوخران والا ) اوڑ‬
‫مجدوم اہل س ّٰنت حضرت قیلہ الجاج نیر سوکت حسن جان بوڑی ‪ ،‬ندڑ اسرقیت حضرت نیر سید‬
‫م‬
‫حمد مطاہر اسرف حیلانی ‪ ،‬امیر جلفہ اسرقتہ ‪ ،‬مولانا علام ڑسول اف جک سواڑی اوڑ تمام علما و‬

‫ع‬
‫مسا تخ اہل س ّٰنت کی صحت و بوانانی اوڑ دڑاڑی مر کی دعا کر تے ہوے الیماس کر تے ہنن کہ تمام‬
‫ھ‬
‫قاڑننن ت ی ان کے لئے دعا فرماننن ۔‬

‫م‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ن‬
‫گ‬
‫جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت منن خواننن کے لئے ’’ ش خوا نن ل ڑاڑ جنیت ‘‘ کی کاڑکردگی *‬
‫سیگ‬
‫یک‬
‫گہ‬
‫ھ‬
‫ت ی قانل سیابش ہے ۔ خواننن منن دپن سے ا ی اوڑ ڑندگی منن پ ی سے واب ی کا سوق پرھا تے‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ظ‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫خ‬
‫ت‬
‫کے لئے ش وا نن تے تمانان کام کیا ے ۔ ہر ماہ جاند کی ‪ 2‬اوڑ ‪ 20‬ناڑ خ و ہر اوڑ ضر ے‬
‫م‬
‫سل‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫دڑمیان جلفہ ُدڑود سربف کا ب سل گرستہ کیی پرس سے اس ش ے ڑپر ا یمام جاڑی ے ۔ دو‬
‫گ‬
‫م‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ش‬
‫ئ‬
‫ص‬
‫م‬
‫ک‬
‫ح‬
‫ن‬
‫م‬
‫م‬
‫س‬
‫س‬
‫ن ے کی اس ب ت ن وڑ ا رم ﷺ ے یاڑک نام ے عدد کی یا نت سے ‪ 02‬یت ُدڑود‬

‫ک ل م‬
‫م‬
‫ک‬
‫ح‬
‫ی‬
‫گ‬
‫ض‬
‫سربف کا وڑد ہونا ہے اوڑ ضروڑی عقاند اوڑ مسانل سے اگاہ کر تے ے ئے ر دڑس لاڑ ی ڑ ھا یا‬
‫ع‬
‫ہے ۔ ُدڑود سربف کا وڑد اوڑ احیما ی ُدعا مسانل و مسکلات کے جل منن تحمدہ بعالی اکسیر ناپت‬

‫ق‬
‫ہونی اوڑ سیکرون خواننن یص نات ہوننن ۔ سال تھر دڑس فران ُسنئے اوڑ جلفہ ُدڑود سربف‬

‫ھ‬
‫منن سرنک ہو تے والی بہ خواننن اوڑ کم سن تحیان بعت خوانی اوڑ بقرپر کی پرپیت ت ی تہان‬
‫محق می س تھ‬
‫ہ‬
‫م‬
‫پ‬
‫گ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ی‬
‫جاصل کرنی ہنن اوڑ ہر سال سالابہ ل لاد ربف ی قد رنی ن ۔ رستہ حھہ رس سے‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ح‬
‫م‬
‫ق‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫م‬
‫حضرت مان حی قیلہ ڑحمہ ال ّٰلہ علیھا کا سالابہ عرس میاڑک ت ی اسی ل ن یانا جانا ے ۔‬
‫م‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ح‬
‫ق‬
‫ہ‬
‫اس سال ت ی ہقتہ ‪ 23‬فروڑی ‪2802‬ء کو سالابہ ل و عرس سربف کا ابعقاد وا ۔ ش‬
‫م‬
‫خواننن کی نگران کے کلیدی حطات کے علاوہ اس سال ملیان سے جیرمہ سیدہ ڑوڑی ناحی تے حصوصی‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ت‬
‫ع‬
‫سرکت کی اوڑ حطات کیا ۔ ش خوا نن کی کاڑکیان اوڑ ان کی سا یون تے والہابہ قیدت و‬
‫م‬
‫تگ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫م‬
‫ق‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫اجیرام کے ساتھ بعت و میاقت ننش کئے ‪ ،‬بہ بقرپت نا خ ن ے جاڑی ڑ ی۔ اس ل ن ونی‬
‫م‬
‫م ہ‬
‫مہمان حطنتہ نا بعت خوان مدعو تہنن کی جانی نلکہ جلے ی کی خواننن اوڑ سنقل تہان دڑس و‬
‫جلفہ منن سامل ہو تے والی خواننن کو تماپیدگی دی جانی ہے اوڑ ان کے دپیی اتمانی جدبہ و سوق پر‬
‫ان کی خوصلہ افرانی کی جانی ہے ۔ ال ّٰلہ بعالی کے قصل سے اس کی پرکات ان ست کی ڑندگی منن‬

‫ہ‬
‫یک ھ‬
‫طاہر ہونی ہنن اوڑ ان ست منن پ ی پر ی ہے ۔ ت ی خواننن سال تھر منن فران کرتم کی‬
‫کم‬
‫س ک ک حض حط ع‬
‫سل‬
‫ظ‬
‫س‬
‫ک‬
‫ّٰ‬
‫عل‬
‫ل‬
‫نلاوت اوڑ ُدڑود سربف ے ل وڑد کا ہدبہ ماڑ ر ے رت یت ا م ڑحمہ ا لہ تہ ے‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ن‬
‫سالابہ عرس سربف منن ابصال بوات کے لئے ننش کرنی ہنن ۔ ش خوا نن کی نگران اوڑ ان‬

‫ح‬
‫ھ‬
‫کی تمام سات ی خواننن کی بہ کاوسنن قانل ت سنن ہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی اتہنن مسلک خق پر اسنقامت‬
‫اوڑ ان کی پیکیون پر اتہنن خراے جیر عطا فرماے ۔‬

‫ک‬
‫م م‬
‫م‬
‫م ع‬
‫قیی ا ظم افربقا حضرت مولانا قیی حمد اکیر ہراڑوی تے تہت حیت اوڑ سوق سے حھ پرس *‬
‫م‬
‫تہلے فران کرتم کے پرحمہ کیر الاتمان اوڑ بقسیر بوڑ العرقان مصیفہ جکیم الامت قیی احمد ناڑ جان‬
‫بع‬
‫م‬
‫ص‬
‫ل‬
‫ن‬
‫ّٰ‬
‫ی‬
‫عل‬
‫ح‬
‫پ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫پ‬
‫گ‬
‫ی ڑحمہ اللہ علتہ کا ا ر ری رحمہ سابع ر تے کا اعراڑ جا ل کیا ۔ داڑا وم ری بوڑنا ( یونی‬
‫افربقا ) کی طرف سے پیاڑ کی گیی اس انگرپری پرحمہ و بقسیر کی ناکسیان منن اساعت ضیا القران‬
‫ل‬
‫پی ی کنسیر کے ڑپر اہیمام کی گیی ہے ۔ انگرپری خوان طیقے کے لئے نلاستہ بہ ننش تہا تحفہ ہے ۔‬

‫م‬
‫لم‬
‫م‬
‫مولانا اوکاڑوی اکاد ی ( العا ی ) تے دپیا تھر منن موخود اہل حیت و عقیدت کے لئے ان پر پیت *‬
‫نک‬
‫ع‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫پر حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ اوڑ حطیت ملت کی ادبو ‪ ،‬ودبو بقاڑپر ُسنئے اوڑ د ے ے ے ’’‬
‫کیحئ گھ ن‬
‫ق‬
‫ن‬
‫ی‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ن‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ناپت ے اوڑ ر ے ص نات ‘‘‪ ’’ www.okarvi‬پیادنا ے ۔ قظ )‪ ‘‘ (Blog‬لاگ‬
‫ھ‬
‫ہون ۔ علاوہ اڑپن قنش نک پر ت ی َقنن پیخ پیاے گئے ہنن‬

‫ل‬
‫م‬
‫کے ‪ Sunni speeches‬۔ ننن پرس قیل امربکا منن قیم حیات سید میوڑ ع ی ساہ تجاڑی تے‬
‫نام سے وپت ساپت پیانی اوڑ علما ے اہل س ّٰنت کی بقاڑپر کی ڑکاڑدنگش اس منن حمع کی ہنن۔‬

‫کے نام سے انک اوڑ وپت ساپت پیانی گیی ہے ۔ اس وپت ‪ okarvi speeches‬اس سال‬
‫ساپت پر ضرف حضرت حطیت‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫ا ظم اوڑ حطیت ملت کی سیکرون بقاڑپر حقوط کی جاڑ ی ہنن ۔‬

‫م‬
‫م ق‬
‫عظم‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ع‬
‫اس نادگاڑی جلے منن مقکر اسلام حضرت مولانا حمد مر الرمان جان ا ی اوڑ ناج ا ماء *‬
‫مح ع بع‬
‫بسن حض م مق مح ظہ بعیم‬
‫م‬
‫ک‬
‫ّٰ‬
‫ی‬
‫حضرت مولانا مد مر ی ڑحمہ اللہ علتہ ے فرڑند و جا ن رت ولانا یی مد ا ر ی کی‬
‫م‬
‫می عل‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ی‬
‫پ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ج‬
‫ض‬
‫ت‬
‫ح‬
‫سی‬
‫ر ر ر ن ش کی جاڑ ی ن ۔ ا ربکا سے یات د وڑ ی ساہ تجاڑی ‪ ،‬راحی سے ولانا‬
‫م‬
‫م‬
‫ھ‬
‫حمد سربف بقش پیدی اوڑ مولانا علام فرند حسیی کی تجرپرپن ت ی سامل کی گیی ہنن ۔ جاحی حمد‬
‫م‬
‫جنیف بقش پیدی مرخوم کی انک تجرپر ’’ لانانی نیر کے لانانی مرند‘‘ گیاڑہوپن سالابہ جلے منن‬
‫ھ‬
‫سابع ہونی ت ی ‪ ،‬اس تجرپر کا انگرپری پرحمہ ہم تے انگرپری خوان ا پئے احیات کے لئے سامل کیا ہے‬
‫۔‬
‫م‬
‫ع‬
‫حضرت الجاج مرڑا حمد ابوت صاحت ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے *‬
‫م‬
‫ھ‬
‫تہت عقیدت مید تھے اوڑ دوست ت ی ۔ ان کے والد گرا ی مرخوم تے پیاڑس ‪ ،‬تھاڑت منن‬

‫گ‬
‫سیگ‬
‫ھ‬
‫میعقدہ ُس ّٰیی کابقربش منن تمانان جدمات اتجام دپن ۔ علما و مسا تخ سے واب ی اس را تے کا‬
‫م‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫اعراڑ ڑ ی ۔ مرڑا حمد ابوت صاحت تے ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ سے‬
‫م‬
‫ھ‬
‫م‬
‫یعلق اپیی نادداست قلم پید ت ی کی خو ‪ 04‬وپن سالابہ عرس سربف کے نادگاڑی جلے منن سابع‬
‫م‬
‫ع‬
‫ہونی ۔ مرڑا حمد ابوت صاحت تے مر عرپر کا بصف حصہ حجاڑ مقدس منن گراڑا ‪ ،‬ہر سال خود اپیا‬
‫حیمہ میی منن لگا تے اوڑ حجاج کی جدمت کر تے ۔ حطیت ملت حضرت علامہ کوکت بوڑانی‬
‫ع‬
‫اوکاڑوی صاحت تے ‪0003‬ء منن ماہ ضیام منن تہلا مرہ اوڑ ‪0002‬ء منن تہلا حخ حضرت مرڑا‬
‫م‬
‫ل‬
‫مع‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫حمد ابوت صاحت ی کے ساتھ ادا کیا تھا ۔ مر پرڑگ حضرت نیر سید عیدا معیود ساہ ت ی ساتھ‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫تھے ۔ حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے ‪0000‬ء منن اخری مرپتہ فربصہ حخ ت ی الجاج مرڑا‬
‫م‬
‫حمد ابوت کے ساتھ ادا کیا ۔ جدہ منن ملاڑمت حیم ہو تے کے بعد مرڑا صاحت کے وپرے منن‬
‫سک‬
‫بوسنع بہ ہو ی بو وطن عرپر ا گئے ۔ ضعف و علالت کے ناوخود ضوم و صلوہ کی ناپیدی منن فرق‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫تہنن انا ۔ ‪ 02‬پرس کی مر منن ڑا ی حیان ہوے ۔ حطیت ملت حضرت علامہ کوکت بوڑانی‬
‫ھ‬
‫اوکاڑوی تے تماڑ حیاڑہ پرھانی اوڑ ندقنن منن ت ی سرکت فرمانی ۔ ال ّٰلہ بعالی ا پئے قصل سے‬
‫م‬
‫حضرت مرڑا حمد ابوت صاحت کے دڑجات نلید فرماے ۔‬
‫ل‬
‫حیونی افربقا منن الجاج حسنن میان واسگرے ‪ ،‬کوکیی پرادڑی کے فرد تھے ۔ جلیفہ اع ی حضرت‬

‫ق‬
‫م‬
‫پرنلوی حضرت مولانا ساہ احمد حیاڑ صدب ی علتہ الرحمہ کے مرند تھے ۔ ہماڑے قیلہ عالم حضرت‬

‫م ک‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫حطیت ا ظم علتہ الرحمہ سے والہابہ عقیدت و حیت ڑ ھئے تھے ۔ حضرت سے ملئے کراحی ت ی اے‬
‫م‬
‫ع‬
‫۔ حضرت حطیت ا ظم کے کہئے پر اتہون تے دڑپن سہر منن اپیی انک عماڑت ’’ ڑصا اکید ی ‘‘ کے‬
‫لئے عطتہ کی ۔ اخری مرپتہ حخ اتہون تے حضرت حطیت ملت حضرت مولانا کوکت بوڑانی اوکاڑوی‬

‫ع‬
‫کے ساتھ ادا کیا ‪ 02 ،‬پرس سے ڑنادہ مر نانی ۔ ال ّٰلہ بعالی اتہنن ا پئے خواڑ ڑحمت منن جگہ عطا‬
‫فرماے ۔‬

‫م ق‬
‫ع‬
‫ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کے مرسد گرا ی جر بقش پید حضرت قیلہ نانی‬

‫صاحت سرق بوڑی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے فرڑند اضعر نیر طربقت حضرت قیلہ صاحت ڑادہ میان حمیل‬
‫ک‬
‫احمد سرق بوڑی مدطلہ العالی کو ا پئے خوان سال فرڑند اکیر کی ڑجلت کا صدمہ دن ھیا پرا ۔‬

‫حضرت صاحت ڑادہ الجاج میان جلیل احمد سرق بوڑی کی ڑجلت ان کے تمام وابسنگان کے لئے‬
‫سدند ساتحہ ہے ۔ سدند علالت کے ناوخود وہ ہمہ وقت ا پئے دپیی مساعل منن مضروف ڑ ہئے ۔ ان‬
‫م‬
‫کی تماڑ حیاڑہ کا احیماع میالی ہوا ۔ ال ّٰلہ بعالی ان کے دڑجات نلید فرماے ۔ مولانا اوکاڑوی اکاد ی‬
‫ل لم‬
‫ُ‬
‫گ‬
‫ظ‬
‫ک‬
‫گ‬
‫ج‬
‫پ‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ع‬
‫س‬
‫( ا عا ی ) اوڑ ل ڑاڑ نیت رست ے اڑکان اوڑ واب نگان ان رڑ ون کی وقات ر ا ہاڑ ب رپت‬
‫کر تے ہوے ان کی معقرت کے لئے دعاگو ہنن ۔‬

‫گرستہ پرس سے نام دم تجرپر میعدد سحصیات اوڑ افراد اس حہان قانی سے ڑجلت کر گئے ۔ الجاج *‬
‫سم‬
‫قاڑوق احمد ہا ی ( امربکا ) ‪ ،‬الجاج حسنن میان واس گرے اوڑ ان کے فرڑند عیدالرڑاق ( حیونی‬
‫م‬
‫افربقا ) ‪ ،‬الجاج خواجہ حمد بعیم کی خوس دامن ( سیال کوت ) ‪ ،‬ماڑہرہ سربف کے خوان سال سید‬
‫م‬
‫م‬
‫سہات احمد پرکانی ( تھاڑت ) ‪ ،‬جاحی حمد جنیت ال ّٰلہ ڑحمانی ( کراحی ) ‪ ،‬حیات حمد اضف کے والد‬
‫ہل س ی م‬
‫ق‬
‫مجی جل ع‬
‫ط‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ح‬
‫س‬
‫ف‬
‫ی‬
‫م‬
‫ناضر جان ( کراحی ) ‪ ،‬رمہ یمہ یم ح عہ ( ونی ا ربقا ) ‪ ،‬ا تہ خ مد ا رف ( ل اناد ) ‪،‬‬
‫م‬
‫سم‬
‫حطیت ملت کے دپرپتہ ڑقیق جاص حیات سید حمد حسن ہا ی ( کراحی ) ‪ ،‬الجاج بوڑ النیی حمن‬
‫م‬
‫م‬
‫میان (کراحی) ‪ ،‬جاقظ حمد اسجاق سمول ( کراحی ) ‪ ،‬صاحت ڑادہ قاڑی حمد میان ( ملیان ) ‪ ،‬اہلتہ‬
‫م‬
‫ل‬
‫ق‬
‫جیرمہ حضرت الجاج اسرف المسا تخ نیر سید احمد اسرف ا حیلانی (کراحی) ‪ ،‬یصل حسن بقش‬
‫حح م‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫ظ‬
‫ج‬
‫ج‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ع‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ی‬
‫پیدی کے والد رم ( راحی ) ‪ ،‬سید یاڑ احمد رنی ( راحی ) ‪ ،‬قاڑی ر یاس کی ی رمہ (‬
‫لہ‬
‫ہری بوڑ) ‪ ،‬مولانا عیدالرسید حھیگوی ‪ ،‬مولانا عیدالوحید ّٰڑنانی ( ملیان ) ‪ ،‬جاقظ میطوڑ ا ی ( کوپری‬
‫م‬
‫) ‪ ،‬حیات سید قاسم ساہ ( پروسی مسجد ) ‪ ،‬حیات حمد ابوت جانی (بساوڑ ) ‪ ،‬اپراہیم اسمال قادڑی‬
‫م‬
‫کی جالہ ( حیونی افربقا ) ‪ ،‬حیات سرداڑ ناسنن ملک کی اہلتہ اوڑ والد ( کراحی ) ‪ ،‬حمد ابوڑ اوکاڑوی‬
‫ق‬
‫ل‬
‫کی اہلتہ ( کراحی ) ‪ ،‬اہلتہ طقرنات ع ی ساہ ( سیال کوت ) ‪ ،‬مولانا عیدالکرتم میرانی ( کوپیا ) ‪ ،‬سید‬
‫م‬
‫م‬
‫قی ع‬
‫ظ‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ج‬
‫ج‬
‫پ‬
‫م‬
‫م‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫پ‬
‫م‬
‫سی‬
‫خ الا م کی ا تہ رمہ ( ا ربکا ) ‪ ،‬د و ر عا م لک کی والدہ رمہ دا ر ڑپیت ( ا ربکا ) ‪،‬‬
‫م ج ی ہل ل س ی م‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫س‬
‫جاحی معراج دپن (اوکاڑا ) ‪ ،‬حطیت ملت کی جالہ رمہ ا تہ ا جاج خ مد ا رف (لا وڑ ) ‪،‬‬
‫حع ہ‬
‫نل‬
‫ُ‬
‫م‬
‫ک‬
‫م‬
‫س‬
‫م‬
‫ی‬
‫ی‬
‫مسجد گل ڑاڑ جنیت کے پروسی اکیر ساہ ‪ ،‬قر کی رہ ‪ ،‬جاوند ر کی والدہ ‪ ،‬کا ران ے والد (‬

‫م‬
‫کراحی ) ‪،‬مسہوڑ قوال حیات مقیول احمد صاپری ( کراحی ) ‪ ،‬والدہ جیرمہ نیر صاپر ساہ ( سری‬
‫م‬
‫کوت ) ‪ ،‬موسی سلیمان میصوڑ ( حیونی افربقا ) ‪ ،‬ضوقی حمد ندپر ( سیاڑی والا کمیاؤند ‪ ،‬کراحی ) ‪،‬‬
‫م‬
‫م‬
‫س م‬
‫ل‬
‫ق‬
‫الجاج یخ حمد بعیم پرسیی کی سوپی ی مان ( یصل اناد ) ‪ ،‬جیرم جاحی ندپر صاحت کی اہلتہ جیرمہ (‬
‫م‬
‫م‬
‫ج‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫م‬
‫ی‬
‫ّٰ‬
‫پ‬
‫کراحی ) ‪ ،‬جاحی حمد بعقوت ڑحمانی ( کراحی ) ‪ ،‬والدہ رمہ جاحی ے یان قادڑی ( راحی ) ‪،‬‬
‫م‬
‫ق عل ہ م م‬
‫ق‬
‫ح‬
‫ج‬
‫ح‬
‫ف‬
‫ی‬
‫ی‬
‫والدہ رمہ قاڑی سید صدا ت ی (لا وڑ) ‪ ،‬ولانا مد ا یجاڑ ڑاج ( ونی ا ربقا ) ‪ ،‬والدہ‬
‫م‬
‫م‬
‫کس‬
‫کراحی ) نیر سید جنیت الرحمن تجاڑی ( اڑاد میر ) ‪ ،‬مسجد کے ( ‪ SHO‬جیرمہ جاحی حمد اسلم‬
‫م ق‬
‫م م ق‬
‫پروسی حیات اقسر جان قادڑی ( کراحی ) ‪ ،‬جاقظ حمد ب ی سہید کے والد جیرم حمد ڑ یع (کراحی ) ‪،‬‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫جیرم پروقنسر ساہ فرند ا حق ( کراحی ) ‪ ،‬حمد عرقان عطاڑی کے تھانی ( کراحی ) ‪ ،‬مسجد کے پروسی‬
‫ل‬
‫م‬
‫ل‬
‫حمد احمد ( کراحی ) ‪ ،‬ممیاڑ ادپت حیات داکیر عیدا یعیم عرپری ( پرن ی سربف ) ‪ ،‬حضرت صاحت‬
‫س‬
‫ڑادہ میان جلیل احمد سرق بوڑی (سرق بوڑ سربف) ‪ ،‬الجاج میان یخ کرم تحش ( گوخرا ) ‪،‬‬
‫الجاج سید مردان ساہ نیر بگاڑا ( نیر خو گوتھ ) ‪ ،‬الجاج نیر علاؤالدپن حسیی نانا (کراحی ) ‪ ،‬حضرت‬
‫م‬
‫م‬
‫س‬
‫مولانا ابو داؤد حمد صادق کی دجیر پیک( گوخران والا ) ‪ ،‬الجاج حمد ابونکر پردب ی پرکانی ( کراحی ) ‪،‬‬
‫م‬
‫م‬
‫ق‬
‫جیرمہ داکیر عرپرہ صدب ی ( کراحی ) ‪ ،‬کم سن اڑقع کرتم ڑندھاوا ( لاہوڑ ) ‪ ،‬حیات حمد ڑقیق‬
‫م‬
‫م‬
‫بق‬
‫ل‬
‫س‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ج‬
‫ی‬
‫ی‬
‫سلیمان کے شسر بعیم لاکھانی اوڑ خوس دامن ( کراحی ) ‪ ،‬رم رڑادہ مد ا م ڑصا صد ی‬
‫م‬
‫سل م‬
‫م‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ی‬
‫مل‬
‫ی‬
‫(کراحی ) ‪ ،‬حیات اسرف یمان ن ( راحی) ‪ ،‬جاحی وت احمد ابصاڑی ( یان ) ‪ ،‬حیات‬
‫م‬
‫قاڑی احمد ڑصا ( حسنیان سربف ) ‪ ،‬امجد سعید فرتمر کی والدہ جیرمہ ‪ ،‬صاحت ڑادہ سید بصیر الدپن‬

‫م‬
‫ساہ ہمدانی ( کراحی ) ‪ ،‬ندڑ اسرقیت حضرت قیلہ نیر سید حمد مطاہر اسرف اسرقی کے خوان سال‬
‫م‬
‫ل‬
‫س‬
‫فرڑند جیرم صاحت ڑادہ نیر سید اوجد الدپن اسرف ا حیلانی ّٰگدو میان ( کراحی ) ‪ ،‬یخ ملت‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ح‬
‫م‬
‫ل‬
‫ح‬
‫س‬
‫ھ‬
‫حضرت الجاج نیر سید اظہاڑ اسرف حیلانی ( وحھا سربف) ‪ ،‬ا جاج مد حقیظ پیاڑی کی یرہ‬
‫م‬
‫ل‬
‫م‬
‫ع‬
‫ن‬
‫ج‬
‫ق‬
‫گ‬
‫س‬
‫ح‬
‫ح‬
‫خ‬
‫ح‬
‫ع‬
‫ی‬
‫ُ‬
‫ض‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ی‬
‫پ‬
‫ی‬
‫رمہ ( و ران والا ) ‪ ،‬رت ر سید عا ق لانی ( مدپتہ وڑہ ) ‪ ،‬امام یدا وڑ و ( ونی‬
‫م‬
‫م‬
‫ج‬
‫ی‬
‫افربقا ) ‪ ،‬داکیر حمد دندات کے پرادڑ ( حیونی افربقا ) ‪ ،‬الجاج ملک پیاڑ قادڑی کے والد رم ساہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ق‬
‫م ق‬
‫حمد اوڑ شسر جیرم سرداڑ حمد ( یصل اناد ) ‪ ،‬حیات یص ال ّٰلہ سیالوی ‪ ،‬نام وَڑ کرکیر جاوند‬
‫م‬
‫م‬
‫س م‬
‫م‬
‫میان داد کی والدہ جیرمہ ( کراحی ) ‪ ،‬جیرم الجاج مرڑا حمد ابوت ( کراحی ) ‪ ،‬الجاج یخ حمد سروڑ‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫ق‬
‫کی خوس دامن جیرمہ ڑپیون ڑقیق ( یصل اناد ) ‪ ،‬جیرمہ ڑابعہ حیاڑ کی والدہ جیرمہ ( حیونی‬
‫م‬
‫م‬
‫حض م م‬
‫س‬
‫ب‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ج‬
‫ج‬
‫خ‬
‫مل‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ح‬
‫افربقا ) ‪ ،‬رمہ ڑ سابہ ڑوڑی ناحی کی جالہ رمہ اوڑ وا ر یی ( یان ) ‪ ،‬رت ولانا مد‬
‫م‬
‫م‬
‫عیداللطیف قادڑی ( گوخران والا ) ‪ ،‬اتجنییر حمد سلیم ال ّٰلہ ( لاہوڑ ) ‪ ،‬ملک حمد اعجاڑ اوڑ ملک‬

‫م‬
‫م‬
‫م سم‬
‫حمد مسیاق کی والدہ جیرمہ ( لاہوڑ ) ‪ ،‬عاڑی ملت حضرت مولانا سید حمد ہا ی میان کی سمدھن‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫س‬
‫م‬
‫م‬
‫ع‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ع‬
‫ح‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ص‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ع‬
‫جیرمہ ( یی ) ‪ ،‬ا جاج لام مد ا ل وڑ ے فرڑند مد یمان وڑ نابو ( یونی افربقا ) ‪،‬‬
‫م‬
‫ع‬
‫الجاج طیم حسنن کی جالہ جیرمہ حمیدہ جابون ( کراحی ) ‪ ،‬مسجد کے پروسی حیات عیدالحقیظ ‪،‬‬
‫گ‬
‫حضرت مولانا سید ساہ پرات الحق قادڑی کی تھاتھی مجیرمہ ( کراحی ) ‪ ،‬دڑناڑ حضرت سیدنا دانا خی‬
‫م‬
‫م‬
‫تحش کے جادم جاص ملک حمد جلیل کے نانا ڑاد تھانی ( لاہوڑ ) ‪ ،‬علامہ نیر سید حمد قاڑوق القادڑی‬

‫م‬
‫لہ‬
‫کی والدہ جیرمہ ( ساہ اناد ‪ ،‬ڑحیم ناڑ جان ) ‪ ،‬۔۔۔ بہ ست قصاے ا ی سے وصال فرما گئے ۔ ڑپیا‬
‫اعقر لیا ولا خواپیا الدپن سنقونا نالاتمان ‪ ،‬امنن‬

‫ع‬
‫قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کے سالابہ عرس سربف کی بقرپیات منن اوڑ ہر حمعہ *‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫ُ‬
‫المیاڑک کو ت ی جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت منن احیما ی قاتحہ خوانی کا تمام اہل اتمان نا حصوص‬
‫ع‬
‫حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ‬
‫ال ّٰلہ علتہ کے عقیدت میدون اوڑ وابسنگان کو ابصال بوات کیا جانا ہے ۔‬

‫ہم انک مرپتہ تھر ان تمام احیاڑات و خراند اوڑ نی وی حے نلر کا سکربہ ادا کر تے ہنن حیہون تے *‬
‫ع‬
‫ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ کے سالابہ عرس سربف کے موقع پر حصوصی‬

‫مصامنن اوڑ عرس میاڑک کی بقرپیات کی جیرپن تمانان سابع کنن ۔ ان تمام حضرات و خواننن‬
‫کے لئے ہم جیر و پرکت کی دعا کر تے ہنن حیہون تے مساجد ‪ ،‬مداڑس ‪ ،‬مراکر ‪ ،‬اداڑون ‪ ،‬جابقاہون‬
‫اوڑ گھرون منن ابقرادی اوڑ احیماعی طوڑ پر ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت اعظم ڑحمہ اللہّٰ‬
‫م‬
‫علتہ اوڑ حضرت مان حی قیلہ ڑحمہ ال ّٰلہ علیہا کو خراج عقیدت و حیت ننش کر تے ہو تے اتہنن‬

‫ج س‬
‫ھ‬
‫مح‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ق‬
‫ی‬
‫م‬
‫ف‬
‫ابصال بوات کیا ۔ ال ّٰلہ بعالی ع ّٰرو ل ی کا ہدبہ یول رما تے اوڑ ماڑے ن و رنی‬
‫ع‬
‫حضرت حطیت ا ظم اوڑ حضرت امان حی علیہما الرحمہ کے دڑجات نلید فرما تے ‪ ،‬امنن‬

‫م‬
‫ُ‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ن‬
‫ن‬
‫گ‬
‫ش خوا نن ل ڑاڑ جنیت کی نگران اوڑ ان کی معاون خوا نن کا م جاص طوڑ پر سکربہ ادا‬
‫م‬
‫گہ‬
‫ح‬
‫ق‬
‫ہ‬
‫ل‬
‫س‬
‫ن‬
‫ن‬
‫کر تے ہنن کہ وہ سال تھر بہ ضرف دپیی ا ی اوڑ حصول پرکات کے لئے ن جانی ن نلکہ‬
‫لہ‬
‫کلام ا ی ‪ُ ،‬دڑود سربف اوڑ وطابف کا کیرت سے وڑد کر کے سالابہ عرس سربف کے موقع پر ابصال‬
‫بوات منن تمانان حصہ لنیی ہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی ان ست کو تے پیاہ خرا تے جیر عطا فرما تے ‪ ،‬امنن‬

‫م‬
‫مسلک‬
‫اس جلے منن ہم سال تھر منن ڑو تما ہو تے وا لے اہم واقعات اوڑ دپیی ی خوا لے سے *‬
‫ھ ک‬
‫ہ‬
‫ضروڑی معاملات پر اظہاڑ حیال کر تے ہنن ۔ ہم نک ت یحئے والی تجرپرون منن سے ت ی حھ اس‬
‫م‬
‫کس ط ک ک ہ‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ج‬
‫ت‬
‫ے ن سا ل کی جانی ن ۔ م سے اس ر ر ن ونی حطا نا ی رج ونی ونا ی ونی و‬
‫لک‬
‫ھ‬
‫گ‬
‫بو اس کے لئے ہم تہت معدڑت خواہ ہنن ۔ کونی نات اگر نادڑست ی یی ہو بو اس کی معاقی‬
‫جا ہئے ہنن ۔ اپیی کاڑکردگی تہیر پیا تے کے لئے ہم ات کی مقید تجاوپر اوڑ کام نانی کے لئے ات سے‬
‫بعاون اوڑ دعاؤن کے دڑخواست گراڑ ہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی ع ّٰروجل ہم ست پر اپیا قصل و کرم فرما تے‬
‫ل‬
‫ل‬
‫‪ ،‬امنن تجاہ النیی الامنن ص ی ال ّٰلہ بعالی علتہ وع ی والہ واصجابہ وناڑک وسلم احمعنن۔‬
‫من جاپت‬

‫م‬
‫سق ع‬
‫ضوقی حمد جنیت الرحمن ی ی‬
‫ضوقی ضوبہ جان قادڑی‬
‫س‬
‫یخ عنیق الرحمن اتجنییر ‪ ،‬بو اے ای‬
‫م‬
‫حمد لیاقت جان قادڑی‬
‫م‬
‫حمد ڑضوان قادڑی ‪ ،‬افربقا‬
‫سی م‬
‫ق‬
‫ق‬
‫ح‬
‫ب‬
‫ی‬
‫ی‬
‫خ مد ڑ ق ش پ دی ‪ ،‬اوکاڑا‬
‫ضوقی علام قادڑ قادڑی‬
‫مولانا علام بوڑانی بقش پیدی‬
‫س‬
‫یخ جلیل احمد ‪ ،‬پیوکی‬
‫م‬
‫مرڑا حمد اڑساد معل ‪ ،‬لاہوڑ‬
‫جاحی جاوند معرقانی‬
‫م‬
‫ق‬
‫حمد عیمان صدب ی ‪ ،‬امربکا‬
‫اظہر اقیال کامران ‪ ،‬سواڑی لنید‬

‫م‬
‫مولانا حمد اکیر بقش پیدی‬
‫سید اسرف اسرقی ‪ ،‬امربکا‬

‫م‬
‫جاحی حیوت الرحمن قادڑی ‪ ،‬پرطاپیا‬
‫مطلوت الرحمن ڑاہد‬
‫مک‬
‫جاقظ سعید احمد ی ‪ ،‬پرطاپیا‬
‫سی م‬
‫ح‬
‫پ‬
‫ع‬
‫خ مد رقان ‪ ،‬رطاپیا‬
‫ضوقی اقیال احمد ‪ ،‬پرطاپیا‬
‫مولانا سیراڑ اتم قادڑی ‪ ،‬افربقا‬
‫م‬
‫ضوقی حمد عرت ‪ ،‬بو اے ای‬
‫م‬
‫س م‬
‫یخ حمد اسرف ‪ ،‬نیر جل‬
‫مولانا قاڑی مظہر عیاس ‪ ،‬ہری بوڑ‬
‫س‬
‫ساہد ابوت فرب ی‬
‫سید اقصال احمد‬

‫ضوقی میان احمد ‪ ،‬لاہوڑ‬
‫جاحی پئے میان قادڑی‬
‫م‬
‫حمد جامد قادڑی‬
‫م‬
‫س‬
‫یخ پیک حمد ‪ ،‬سرق بوڑ سربف‬
‫م‬
‫ضوقی ابو حمد قادڑی‬
‫م‬
‫ح‬
‫ساج‬
‫سید مد د واڑنی‬
‫م‬
‫جاقظ حمد اکرم ‪ ،‬اوکاڑا‬
‫م‬
‫مولانا حمد اضف ڑمصان‬
‫م‬
‫ق‬
‫مولانا علام حمد صدب ی ‪ ،‬انک‬
‫س‬
‫یخ پیوپر احمد ‪ ،‬حسنیان سربف‬
‫س م ع‬
‫یخ حمد مر ‪ ،‬ڑاول پیدی‬
‫م‬
‫حمد ڑنیر جان قادڑی ‪ ،‬تھاڑت‬
‫م‬
‫خواجہ حمد بعیم ‪ ،‬سیال کوت‬

‫عیداللطیف قادڑی‬
‫ل‬
‫حیدڑ ع ی قادڑی‬
‫ہاسم میصوڑ قادڑی ‪ ،‬حیونی افربقا‬
‫م‬
‫حمد اپراہیم اسمال قادڑی‪ ،‬افربقا‬
‫حمید ال ّٰلہ قادڑی‬
‫ع ل‬
‫ح‬
‫پ‬
‫م‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ڑاجا یدا د ‪ ،‬اس رے یا‬
‫ل‬
‫سید میوڑ ع ی ساہ تجاڑی ‪ ،‬امربکا‬
‫م‬
‫حمد الیاس ‪ ،‬ہانی بواپیت‬
‫پیوپر اقیال قادڑی ‪ ،‬امربکا‬
‫ڑمرد بقلنن‬
‫س‬
‫جاحی ڑحیم الدپن فرب ی‬
‫س‬
‫یخ میطوڑ احمد قادڑ ی ‪ ،‬لاہوڑ‬
‫احمد ڑسید ‪ ،‬حیونی افربقا‬

‫م‬
‫م‬
‫جاحی حمد حسنن یمن‬
‫س م‬
‫یخ حمد سقیق ‪ ،‬لاہوڑ‬
‫م‬
‫سید حمد جنید قادڑی‬
‫م‬
‫حمد عیمان قلیدڑی‬
‫نیر مقصود احمد سعید ‪ ،‬ڑا تے وند‬
‫م‬
‫ق‬
‫ع‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ب‬
‫ی‬
‫مد یمان ش پ دی ‪ ،‬بو ے‬
‫س‬
‫یخ جالد ڑسید بقش پیدی‬
‫ضوقی میطوڑ احمد ‪ ،‬وڑپر اناد‬
‫سید بوڑانی حقیظ قادڑی‬
‫سییر احمد قادڑی‪ ،‬مابسہرہ‬
‫م‬
‫حمد جلیل معل ‪ ،‬گوخران والا‬
‫م‬
‫حمد بواڑ ‪ ،‬امربکا‬
‫جاحی علام حسنن‬

‫م‬
‫حمد اقیجاڑ حسن قادڑی ‪ ،‬سعودی عرت‬
‫م‬
‫ملک حمد ڑمصان‬
‫علام ڑسول قادڑی‬
‫م‬
‫حمد نادڑ جان قادڑی‬
‫س‬
‫یخ فرند پیاڑ ‪ ،‬تھاڑت‬
‫ع مصطق‬
‫ض‬
‫لام ی ڑ وی ‪ ،‬تھاڑت‬
‫س ع ل‬
‫یخ مر ع ی ‪ ،‬لاہوڑ‬
‫پیوپر احمد جان‬
‫م‬
‫مولانا حمد عرقان قادڑی‬
‫ندتم پیاڑ‬
‫م‬
‫) جاحی حمد ابوڑ ( اوکاڑوی‬
‫مولانا علاء الدپن قادڑی‬
‫م‬
‫حمد عالم عیاسی‬

‫م‬
‫حمد ڑاسد جان قادڑی‬
‫م‬
‫حمد اقیال ننیی ‪ ،‬دپیی‬
‫ل‬
‫اضعر ع ی‬
‫م‬
‫حمد ناپر‬
‫م‬
‫حمد ڑنیر الدپن‬
‫م‬
‫ح‬
‫ض‬
‫جاقظ مد نا ر قادڑی‬
‫م‬
‫س‬
‫حمد عاڑف فرب ی ‪ ،‬جاپیا‬
‫م‬
‫س‬
‫حمد الطاف فرب ی قادڑی‬
‫م‬
‫حمد بوڑ جان قادڑی‬
‫ع‬
‫جاحی طیم حسنن‬
‫م ط‬
‫حمد قیل نانا‬
‫م‬
‫حمد فرقان جان‬
‫م‬
‫مولانا حمد بسیم‬

‫م‬
‫مولانا حمد ناضر‬
‫م‬
‫جاقظ حمد ڑاسد قادڑی‬
‫ل‬
‫سید ناقت ع ی‬
‫م‬
‫جاقظ حمد سقیق بوڑانی ‪ ،‬ملیان‬
‫جنید ڑصا ‪ ،‬تہاول بوڑ‬
‫ہاڑون ڑسید ‪ ،‬ابو طیی‬
‫م‬
‫حمد سلیم س ّٰیی‬
‫عیدالعقاڑ داؤد‬
‫سید اسحق عادل ساہ‬
‫م‬
‫) حمد پروپر اسرف ( امربکا‬
‫م‬
‫خودھری حمد سقیق مہر‬
‫م‬
‫حمد وقاص دڑانی‬
‫عامر جان دڑانی‬

‫احسن عیدالرحمن‬
‫س‬

‫یخ سکیل قادڑی‬
‫م‬
‫حمد ناسر‬

‫)سید اسلام ساہ (امرنکہ‬
‫جادمنن و معاوننن‬
‫م ل لم‬
‫) مولانا اوکاڑوی ؒ اکاد ی ( ا عا ی‬
‫‪Email : maulanaokarviacademy@yahoo.com‬‬

‫س َّ‬
‫مح ص َّل‬
‫ّٰ‬
‫ل‬
‫عل‬
‫َالل ُہ ڑت مد ی تہ و ما‬
‫معروصات‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫بصاڑت ت ی بعمت ہے اوڑ سماعت ت ی ‪ ،‬مگر ان دوبون ضقات بسری‬
‫کو کرت منن منیلا کردنا گیا ہے ۔‬
‫ھ‬
‫سل‬
‫کرت ت ی کنسا ‪ ،‬خو ب سل سے جاڑی و ساڑی ہے‬
‫ھ‬
‫اوڑ کونی مداوا ت ی تہنن ہونا‬
‫ھ‬
‫ابسان اپیا اڑڑان اوڑ ڑدنل ت ی ہوسکیا ہے ؟؟‬
‫ل‬
‫دپیا کش دگر پر جل بک ی ہے ؟ ڑاہنن کم ہوگیی ہنن نا میرلنن گم ہوگیی ہنن‬
‫ھ‬
‫کہئے ہنن ات موت کی ت ی خرند و فروحت ہونی ہے ‪ ،‬گونا انک کاڑوناڑ ہوگیا ہے‬
‫ل‬
‫حھوت ‪ ،‬کرت سن ‪ ،‬دہست ‪ ،‬مہیگانی ‪ ،‬اپرو ڑپری ‪ ،‬حع ی دواننن‬
‫یگ‬
‫دپ ی ‪ ،‬دڑون ۔۔۔ موت کے ا پئے تہت سے ڑوت اوڑ تے بش‬
‫ل‬
‫! اکیلا اسرف ا مجلوق ! حئے بو تھی کنسے اوڑ کنیا ح ےئ‬

‫م‬
‫بہ وطن بو ات قیل ہوگیا ‪ ،‬وقت کے پرندون تے تھر کرنلا پیا کی ہونی ہے‬
‫سی پ ع‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ک‬
‫سک‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫گ‬
‫ن‬
‫س‬
‫ی‬
‫بعرہ سنیی نلید کر تے اوڑ اسوہ یری ر ل سے ر ران ون ر رج ُڑو و ے ن‬
‫ھ‬
‫کس‬
‫اس ققیر حقیر کو ی طرج کا ت ی کونی دعوی تہنن ‪ ،‬سرمیدگی سی سرمیدگی ہے‬
‫کاس کہ تجات کی کونی ضوڑت بکل اے‬
‫ال ّٰلہ بش ناقی ہوس‬
‫ق‬
‫طالت دعا ! کوکت بوڑانی ڑا َاحمد ( ﷺ ) س یع‬
‫) اپرنل ‪۱۴۲۱‬ء ( اوکاڑوی عقرلہ‬

‫عظ‬
‫مقکر اسلام حضرت علامہ مولانا محمد قمر الرمان ا می دپیاے اہل س ّٰنت منن ممیاڑ مقام ڑکھ ےئ‬
‫ع‬
‫م ق‬
‫ہنن ان کی ڑنانی ناڑہا سیاگیا کہ ناکسیان منن حضرت حطیت ا ظم مولانا حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ‬
‫ال ّٰلہ علتہ تے مسلک خق اہل س ّٰنت و حماعت کی میالی جدمت کی ۔ وہ بہ ہو تے بو لوگون نک اواڑ‬

‫تہ‬
‫پ مح عق قل تھ‬
‫ح‬
‫م‬
‫ی‬
‫س‬
‫ق‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ک‬
‫س‬
‫ض‬
‫خق بون بہ یی ۔ رت ر ا لام کا ربہ کہ ات ون تے ا یی یت و یدت م پید ی‬
‫تہ‬
‫س م‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫خ‬
‫ن‬
‫فرمانی ۔ الجاج یخ حمد عرقان بقش پیدی کے دڑبعہ بہ تجرپر ہم نک ی و ہدبہ قاڑ ن ے ۔‬
‫ع‬
‫م ق‬
‫حطیت ا ظم ناکسیان حضرت علامہ حمد س یع اوکاڑوی علتہ الرحمہ‬
‫پ ہ‬
‫م‬
‫م‬
‫س‬
‫ک‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ح‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ن‬
‫م‬
‫ص‬
‫ض‬
‫ج‬
‫ہیدوسیان سے رطاپیا رت ر تے ے بعد ن یات سے ن تے نانان یا ر وا ان ن رت‬
‫م ق‬
‫علامہ حمد س یع اوکاڑوی علتہ الرحمہ کی دات تہت تمانان ہے ۔ ان کی تے میل حطاپت تے حہان‬
‫بس‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ح‬
‫س‬
‫ک‬
‫ح‬
‫عل‬
‫س‬
‫پرضعیر ناک و ہید و افربقا وعیرہ کے عوام کو مسلک کے ص ے ساتھ ساتھ ق ڑ ول تہ ا ی تہ‬
‫ھ‬
‫والنیاء کی دولت فراوان سے بواڑا وہنن طیفہ علما تے ت ی ان کے حطیات کو اپیہانی قدڑ کی بگاہ سے‬
‫ملاحطہ فرمانا ۔‬

‫ل‬
‫ھ‬
‫ان کی دات اس اعنیاڑ سے تہت ممیاڑ ت ی کہ اتہون تے امام اہل س ّٰنت مجدد وقت اع ی حضرت‬

‫قاصل پرنلوی علتہ الرحمہ والرضوان کے مسلک اوڑ ان کے عسق ڑسول علتہ الیحتہ والنیاء اوڑ ان کے‬
‫م‬
‫مساعر و حسوسات کو کروڑون مسلمابون نک تہیجانا اوڑ اتہنن عقیدے کی سیاحت دی ن ری‬
‫م‬
‫گ ہ‬
‫ندعقیدگی اوڑ مرا ی سے بکال کر ضراط سنقیم پر گامرن فرمانا ۔‬

‫ق‬
‫ان کا انداڑ حطات اپیا دل بسنن تھا کہ لوگ بوڑی بوڑی ڑات ان کے حطات سے یص نات ہو تے‬
‫م‬
‫ہئ ک‬
‫ہ ل‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ح‬
‫ت‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ت‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ڑ ے اوڑ ن ی ا یا ت وس ن ر تے نلکہ ر حہ ان کا دوق ما ت ’’ ن ر ے‬
‫حطاپت دڑاڑ پر فرما ‘‘ کا مطالتہ کرنا تھا ۔ لوگ کیی کیی سال نک ان کا انک حطاتسنئے کے لئے‬
‫سرانا اپیطاڑ ڑ ہئے ۔‬
‫ھ‬
‫حطاپت کے ساتھ ساتھ علامہ اوکاڑوی علتہ الرحمہ انک صاحت طرڑ ابساء پرداڑ اوڑ مصیف ت ی‬
‫عل‬
‫ق‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ت‬
‫م‬
‫گ‬
‫ن‬
‫تھے ۔ ان کی تجرپرپن ت ی ان کی حطاپت کی طرج اپیہانی ی ر اپیہانی عام م ن ۔‬
‫کس ھ‬
‫اسیدلال کی قوت کے ساتھ اسلوت تجرپر اس قدڑ دل بسنن تھا کہ ی ت ی کیات کا اعاڑ کر تے‬

‫والا اجنیام نک اس منن دونا ڑہیا ۔ دکر حمیل ‪ ،‬ڑاہ خق ‪ ،‬دڑس بوحید ‪ ،‬بوات العیادات اوڑ سام‬
‫کرنلا وعیرہ اس کی تہیرپن میال ہنن ۔‬

‫ھ‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫علامہ اوکاڑوی ضرف انک حطیت اوڑ مصیف ی تہنن نلکہ انک طیم مجاہد ت ی تھے ۔ ان کے‬

‫دوڑ منن اتھئے والی تمام دپیی اوڑ سیاسی تجرنکون منن ان کا کرداڑ انک قاند اوڑ مجاہد کا کرداڑ تھا ۔‬
‫لیک‬
‫س‬
‫م‬
‫ن‬
‫سوسلرم کے علتہ کے ماخول منن ضرف دپن اوڑ مسلک کے خوا لے سے اتہون تے ا ن ن حصہ‬
‫ق م سمیل ک ج من تھ‬
‫ل ق م سمیل‬
‫م‬
‫ک‬
‫س‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ح‬
‫یا اوڑ و ی ا ی ے ڑ ن ی ت وے اوڑ و ی ا ی ے ا لاس ن ی ا ی عا مابہ وقاڑ‬
‫ک‬
‫اوڑ عیرت دپیی کے ساتھ جلوہ گر ہو تے خو ان کا طرہ امنیاڑ تھا ۔ ان کی ناوقاڑ سحصیت ‪ُ ،‬پر شش‬

‫نک‬
‫ع‬
‫ط‬
‫گ‬
‫ق‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ی‬
‫ک‬
‫گ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ف‬
‫ہ‬
‫حہرہ نات ناک ا ن اوڑ یواڑن انداڑ و ر رد و یا ر رنا تھا ۔ ان کی پیہا دات تے اپیا یم‬
‫پیط‬
‫ھ‬
‫سک‬
‫کاڑنامہ اتجام دنا کہ بعص وقت پری پری یمنن ت ی اتجام تہنن دے ینن ۔‬
‫ان کی تے نانان مقیولیت اوڑ ان کے دڑبعہ علتہ خق سے خوف ڑدہ ہوکر ندعقیدہ افراد تے ان پر قانلابہ‬
‫م‬
‫ل‬
‫حملہ کیا ۔ ان کی گردن اوڑ سر وعیرہ منن سدند ڑحم اے۔ ہنیون اسنیال منن ڑ ہے یکن سقاء‬
‫نات ہو تے کے بعد تھر اسی سدت کے ساتھ احقاق خق اوڑ ابطال ناطل کا فربصہ اتجام د پئے منن‬
‫مضروف ہو گئے اوڑ بہ فربصہ وہ ڑندگی کی اخری سابش نک اتجام د پئے ڑ ہے ‪ ،‬نلاستہ وہ ’’ اننن‬
‫خوان مردان خق گونی و تے ناکی ‘‘ کی تہیرپن میال تھے ۔‬

‫ع‬
‫علامہ اوکاڑوی علتہ الرحمہ تے حطاپت ‪ ،‬بصنیف و نالیف ‪ ،‬پیطیم و تجرنک ‪ ،‬ب میر مساجد و مدڑاس ہر‬
‫ع‬
‫میدان مل منن اپیہانی تمانان کاڑنا مے اتجام د تے۔علامہ اوکاڑوی سجاعت و بسالت ‪ ،‬خرأت و‬
‫ہمت ‪ ،‬حمیت دپیی ‪ ،‬خق گونی و تے ناکی کا تہیرپن تموبہ تھے ۔‬
‫مصطق‬
‫ء منن تجرنک حیم پیوت منن سرکت اوڑ عرت و ناموس ی کے تحقظ کے خرم ‪1952-53‬‬
‫م تہ حی تھ‬
‫ک ع‬
‫م‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ن‬
‫گ‬
‫گ‬
‫م‬
‫نن ا نن ل خ دنا یا ۔ اس اپیاء ن ان ے دو بو ر صاحت ڑادون کا وصال و یا ۔ ل‬
‫ہ‬
‫کے حکام تے دڑخواست کی کہ اگر ات معاقی مانگ لنن ( حش کو حقتہ ڑکھا جاے گا ) بو اج ی ات‬

‫مصطق‬
‫کو اڑاد کردنا جاے گا ‪ ،‬بو اتہون تے خوات دنا کہ منن تے ناموس ی علتہ الیحتہ والنیاء کی‬
‫م‬
‫حقاطت اوڑ عقیدہ حیم پیوت کے تحقظ کے لئے اس تجرنک منن حصہ لیا ہے اوڑ بہ مکن تہنن کہ‬
‫م‬
‫منن ا پئے تحون کے وصال کی دڑد ناک جیر سن کر ا پئے عقیدے اوڑ سن کے جلاف معدڑت‬

‫گ‬
‫کرلون ۔ تھر ان پر قید و پید کی سجنیان پرھادی ینن مگر ان کے ناے اسنقامت منن لعرس تہنن‬

‫ع‬
‫انی ۔ تہرجال علامہ موضوف ہر اعنیاڑ سے انک طیم قاند اوڑ مجاہد تھے حیہون تے کم و ننش بصف‬

‫م‬
‫صدی نک امت سلمہ کی دپیی و قکری ڑہ تمانی کی ۔ جداے وجدہ قدوس حیت القردوس منن ان‬
‫کے مقامات کو نلید فرماے ۔ امنن تجاہ حینتہ سیدالمرسلنن ﷺ‬

‫جاک ساڑ‬
‫م ق‬
‫حمد مر الرمان جان ا‬

‫عظم‬

‫ی‬

‫م‬
‫سیکرنیری جیرل وڑلد اسلامک سن‬
‫م‬
‫قیم ماتحسیر ۔ ابگلنید‬

‫حخ اکیر کا بوات‬
‫ناسمہ بعالی‬
‫ل‬
‫تحمدہ بعالی جاڑ مرپتہ حخ پیت ال ّٰلہ کی سعادت بصیت ہونی یکن حخ اکیر کی سعادت بصیت تہنن ہونی‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫‪ ،‬تجنن سے ات نک بہ ضرت ا میل ناڑہا ُسیی اوڑ کیابون منن پرھا ت ی ’’ دل ندست اوڑ کہ حخ‬
‫ل‬
‫م‬
‫ع ھ‬
‫اکیر ست ‘‘ یکن اس پر مل ت ی بہ ہوسکا ۔ میلا عرپر گرا ی علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی سلمہ‬
‫ق مح سق‬
‫م‬
‫ق‬
‫ی‬
‫ک‬
‫ک‬
‫م‬
‫پ‬
‫ل‬
‫ع‬
‫عل‬
‫ج‬
‫تے کہا کہ حطیت ناکسیان حضرت مولانا جا ظ مد ع اوکاڑوی تہ ا رحمہ ے رس ے و ع ر لہ‬
‫ھ ک‬
‫کے لئے منن ت ی حھ کہون ( منن تے مولانا اوکاڑوی علتہ الرحمہ کو جاقظ اس لئے کہا کہ منن تے‬
‫ظ‬
‫م‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫م‬
‫ک‬
‫عرالی دوڑان حضرت علامہ مولانا احمد سعید صاحت کا ی و د ھا ے کہ وہ ولانا اوکاڑوی و جاقظ‬
‫صاحت کہہ کر مجاطت فرما تے تھے ) ۔‬
‫ل‬
‫م‬
‫ی‬
‫پرنکت کے حملہ کے بعد ا پئے موضوع کی جاپت ڑخوع کر تے ہوے قاڑسی کے انک اوڑ ضرت ا ل‬
‫م ق‬
‫سے اسنقادہ کر تے ہوے ’’ مسک ابست کہ خود پیوند بہ کہ عطاڑ نگوند ‘‘ ۔ مولانا حمد س یع صاحت‬
‫م‬
‫کے یعلق کیا کہون ! موضوف ہمہ ضقت موضوف تھے ۔ ان کی کون سی خونی کو ضیظ تجرپر منن‬

‫م ق‬
‫لاؤن اوڑ کون سی خونی کو پیان بہ کرون ؟ حضرت مولانا حمد س یع صاحت علتہ الرحمہ سے ملاقات‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫منن انک حصوضیت بہ ڑ ی کہ موضوف حضرت علامہ مولانا علام ع ی صاحت اوکاڑوی کے ساگرد‬

‫ل‬
‫ڑسید تھے اوڑ مولانا علام ع ی صاحت علتہ الرحمہ میرے نیر تھانی ‪ ،‬اس بسنت کا حطیت ناکسیان‬
‫ل ک‬
‫م ق‬
‫ض‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫مولانا حمد س یع اوکاڑوی صاحت تہت جاط ڑ ے اوڑ اس و ع داڑی و یہا تے ڑ ے اوڑ ات ان‬
‫م‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ج‬
‫ی‬
‫کے فرڑند اڑحمید مولانا کوکت بوڑانی سلمہ اپیاے ہوے ہنن اوڑ ناپیدی سے والد رم ناج ا ما‬

‫م م ع‬
‫ک م ق پ ض ک مع‬
‫بعیم‬
‫ک‬
‫ک‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫قیی حمد مر صاحت ی ے رس نا بون ون کہ سالابہ قاتحہ ے و ع ر جا ری و اپیا ول‬
‫پیالیا ہے ۔‬

‫ل‬
‫ماصی منن واصل تحق ہو تے والون کا ضرف ندکرہ ہونا تھا یکن موخودہ َدوڑ منن ساننش تے اواڑ‬
‫ھ‬
‫م ق‬
‫اوڑ سنتہ ( کنسنت ) اتجاد کر کے کاڑنامہ اتجام دنا ہے ۔ اج ت ی حطیت ناکسیان مولانا حمد س یع‬
‫اوکاڑوی علتہ الرحمہ کی بقرپرون کے کنسنت کے دڑبعہ مولانا کی بقرپرپن ُسیی جانی ہنن نا مولانا مرخوم‬
‫کی ڑندہ نادگاڑ کوکت بوڑانی کی بوڑاپیت کاڑ فرما بظر انی ہے ۔‬

‫م‬
‫ناطرپن گرا ی ! عرپری مولانا کوکت بوڑانی اوکاڑوی سلمہ کی خواہش کے مطابق بہ حید سطوڑ لکھ‬
‫ہ محھ پ ہ‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ک‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫م‬
‫ع‬
‫حی‬
‫ح‬
‫ی‬
‫دی نن ے ا یی خ مدانی کا ا یراف ے۔ یری نیت بو ن اتم کہ ن داتم ۔ ن خ ا یر کا‬
‫بوات اگر ان سطوڑ سے جاصل ہوجاے بو سودا مہیگا تہنن ۔‬

‫بہ سطوڑ قلم پرداستہ ہنن وڑبہ حطیت ناکسیان کو خراج عقیدت ان کے سانان سان ہونا جا ہئے (‬
‫) تھا‬
‫مح ظہ بعیم‬
‫مد ا ر ی‬
‫اعراڑی حطیت جامع مسجد اڑام ناع ‪ ،‬کراحی‬

‫ّٰ‬
‫بسم اللہ الرحمن الرحیم‬

‫حطاپت کا ڑحسیدہ اقیات‬
‫ل‬
‫میرا نام سید میوڑ ع ی ساہ تجاڑی قادڑی ڑضوی ہے ‪ ،‬ضوبہ پیجات منن صلع انک کے گاؤن عوڑ‬
‫گ‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ص‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫ھ‬
‫سیی کا ڑ ہئے والا ہون ‪ ،‬میرا بعلق سادات تجاڑی را تے سے ے ۔ ع انک یجات ے ان‬

‫صلعون منن سامل ہے خوکہ امن و سکون ‪ ،‬اتجاد و ابقاق منن اپیی میال ات ہے ۔ بہ صلع جاڑ‬
‫مس‬
‫ھ‬
‫ل ح‬
‫تحصیلون پر یمل ہے حت کہ حضرو دن ی ت صیل ہے ۔ علاقہ ح حھ تے علوم دننتہ کے خوالہ سے کاقی‬
‫عم ج ہ ع حھ‬
‫من عل م ت ع حھ‬
‫ح‬
‫ح‬
‫خ‬
‫سہرت جاصل کی اس ن ماء و سا خ لاقہ ھ کا کاقی ل د ل ے ۔ لاقہ ھ وکہ‬

‫علماے دپن کا مرکر ڑہا اوڑ کونی ابسا گاؤن بہ تھا حش منن ابسا قانل قاصل عالم بہ ہو حش کے‬
‫کس‬
‫سا مئے ُدوڑ دڑاڑ علاقون ( کانل ‪ ،‬قیدہاڑ ‪ ،‬ہیدوسیان ‪ ،‬میر ) سے طلیاء تے جاضر ہوکر ڑابواے نلمد‬
‫ل‬
‫س‬
‫س‬
‫ظے بہ کیا ہو ۔ میال کے طوڑ پر یخ الجدپت حضرت مولانا عیدا حق صاحت نیر ڑنی ‪ ،‬یخ الجدپت‬
‫ع‬
‫ل‬
‫حضرت علامہ مولانا میان عیدا حق صاحت عوڑ سیی ‪ ،‬حضرت مولانا قطت الدپن صاحت عوڑ‬
‫م‬
‫ع‬
‫ج ل قق ہ‬
‫مس‬
‫م‬
‫س‬
‫س‬
‫ہ‬
‫م‬
‫پ‬
‫سیی ‪ ،‬حضرت مولانا حمد عوت ساہ لا تہ ‪ ،‬ی نانا صاحت کا ل بوڑ و ی ا ی پیا ر وڑ تھا‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫کہ علاقہ ح حھ علم و قصل کے لجاط سے ہیدوسیان کا تمر قید و تجاڑا ہے ۔ ان پرڑگون تے علاقہ ح حھ‬
‫ع‬
‫منن جاصی دل حسیی لی اوڑ میعدد ب میرانی کام کراے ‪ ،‬داڑالعلوم پیاے اوڑ تہت ڑنادہ مسجدپن‬
‫حق‬
‫پیاننن حن منن ڑنادہ سے ڑنادہ اہل س ّٰنت و حماعت ُس ّٰیی ی ی (پرنلوی) عقیدے کے امام تھے۔‬
‫حھ‬
‫مس‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ہ‬
‫ُ‬
‫پ‬
‫ت‬
‫م‬
‫ن‬
‫ن‬
‫س‬
‫ّٰ‬
‫علاقہ ھہ ن ا ل نت کی پیانی ونی ‪ 32‬ساجد ن حت کہ جاڑ نا نا خ جد ن اس دوڑ‬
‫ک‬
‫منن دبوپیدی وہانی عقیدہ ڑ ھئے والون کی تھنن ۔ حت نک اہل س ّٰنت کے مدکوڑہ نالا بہ پرڑگ‬

‫حیات ڑ ہے بو اپیی ڑندگی منن اہل س ّٰنت کے علما کو اپیی اپیی مساجد منن بقرپرون کے لئے نلوا تے‬
‫م‬
‫ڑ ہے حش منن حصوصا مولانا حمد سربف بوڑی قصوڑی صاحت ‪ ،‬حضرت مولانا عیدالعقوڑ ہراڑوی‬
‫ھ‬
‫م ق‬
‫صاحت اوڑ حضرت مولانا حمد س یع اوکاڑوی صاحت قانل دکر ہنن ‪ ،‬بہ علما علاقہ ح حھ اکر الگ‬

‫الگ مقامات پر بقرپرپن کر کے عوام کو عقیدہ اہل س ّٰنت پر بکا ڑ ہئے کی نلقنن کر تے ڑ ہئے تھے مگر‬
‫اقسوس کہ حت گاؤن کے بہ پرڑگ اوڑ اہل س ّٰنت کے پرا تے علما قوت ہو گئے بو پیی بسل تے علما‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫اہل س ّٰنت کی طرف بوجہ بہ دی اوڑ بہ ی علاقہ ح حھ منن ابسا عالم دپن پیدا ہوسکا خو کہ عوام‬

‫کو عقاند اہل س ّٰنت کے خوا لے سے ڑہ تمانی کرسکیا اوڑ اقسوس کہ اس علا قے منن کام بہ ہو تے کی‬

‫وجہ سے اہل س ّٰنت کی ‪ 32‬پیانی ہونی مساجد ات ساڑی کی ساڑی دبوپیدی وہانی کے قیصے منن ہنن‬
‫ھ‬
‫‪ ،‬ان منن سے ضرف دو مسجدپن اہل س ّٰنت کے ناس ہنن ۔ مگر ُان پر ت ی کیا اعیماد کرسکئے ہنن کہ‬
‫ہ پیلیع‬
‫بہ کت نک ڑہنن گی ۔ ات گاؤن منن موخودہ جالات منن ان ی ی وہانی دبوپیدی کی بعداد‬
‫ڑنادہ ہے ۔ ات ہر مسجد منن دبوپیدی عقیدے کے امام موخود ہنن اوڑ بہ لوگ گاؤن منن ات ہر‬
‫ھ ک‬
‫ہر مجلہ منن مداڑس ت ی ھول ڑ ہے ہنن ان کی اسی نلعاڑ کا ننیحہ ہے کہ گاؤن کے افراد ان کے‬

‫ساتھ بعاون کرڑ ہے ہنن اوڑ ا پئے تحے ان سے پرھواکر ا پئے تحون کے اتمان اوڑ عقیدے پرناد‬
‫ھ‬
‫کرڑ ہے ہنن ۔ ہماڑے گاؤن علاقہ ح حھ منن ان پیلیعیون کی اسی بوڑس کا ننیحہ تھا کہ منن( سید‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫میوڑ ع ی ساہ تجاڑی قادڑی ڑضوی ) ت ی ان کے خوس تما دامن فرپت منن اگیا تھا اوڑ ان کے‬
‫پیل ع‬
‫ساتھ دو سال سات ماہ منسلک ڑہا تھا اوڑ ا پئے گاؤن کی مسجدون منن ی ی بصات کا دڑس دنا‬
‫گ‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ّٰ‬
‫ھ‬
‫س‬
‫کرنا تھا ‪ ،‬عالیا اس وقت میری مر ‪ 03‬سال کی ت ی ۔ میرا ساڑا رابہ ا مد للہ ا ل ّٰنت ے‬
‫مگر منن تے ان پیلیعیون کی خوس تما نابون سے میاپر ہوکر ان کے ساتھ ڑنادہ اتھیا ننیھیا سروع کردنا‬
‫ل‬
‫تھا ۔ میرے والد ماجد قیلہ ا حمد ل ّٰلہ انک عالم دپن ‪ ،‬اسکول پیجر ‪ ،‬جکیم اوڑ عاسق ڑسول ( ﷺ )‬
‫تھ محھ س‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫گ‬
‫ل‬
‫ابسان ہنن اس وقت میرے والد ماجد ی ے یی سے ان و ون سے ُدوڑ ڑ ے ے ے ہا‬
‫م‬
‫قگ‬
‫ھ‬
‫کر تے اوڑ حقا ت ی ہو تے تھے مگر حھ پر ان کی نابون اوڑ ح ی کا کونی اپر تہنن ہونا تھا ( العیاد‬
‫ناال ّٰلہ ) اہستہ اہستہ دن گرڑ تے ڑ ہے ‪ ،‬سال ماہ گرڑ تے ڑ ہے ۔ میری قسمت کے دن تھر تے کے‬

‫ع‬
‫پیل ع‬
‫فرپت انا سروع ہو تے ۔ قدڑت جدا کی کہ میرے گاؤن عوڑ سیی کے ڑ ہئے وا لے انک ی ی‬
‫گ‬
‫م‬
‫حماعت کے امیر کے ننئے حمد ڑنیر ملک میرے جاص دوست تھے ان کے ھر منن حضرت قیلہ مولانا‬
‫کس‬
‫م ق‬
‫حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی بقرپر کی ن ینن تھنن خو سہادت حضرت امام حسنن ڑصی‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ُ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ت‬
‫ج‬
‫ل‬
‫س‬
‫ال ّٰلہ عتہ کے موضوع پر تھنن خو وہ ہر سال دس رم ے دن گا ر ُ یا ر تے ے ۔ ابقاقا بہ اس تے‬
‫م‬
‫گ‬
‫کنس ک م گ‬
‫ح‬
‫ھ‬
‫ت‬
‫م‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫ے ی ُسنئے ے ئے دپن ان نیون و نن ھر ے انا اوڑ پیت ڑکاڑدڑ نن لگاکر ست ھر‬
‫گ‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫وا لے ننیھ کر ُسنئے لگے حت حت ہم بہ سہادت کی کنسنتسنئے ڑ ہے ست ر وا ون کا اوڑ جاص‬
‫م‬
‫ک‬
‫طوڑ پر میرا ڑو ڑو کر ُپرا جال ہونا ڑہا حھے ناد ہے کہ منن اپیا ڑونا کہ ساند ہی یھی ڑندگی منن تہ ےل‬
‫کیھ‬
‫ہ‬
‫ی ابساڑونا ون گا‬

‫م‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ک‬
‫۔ بہ ڑندگی منن َمنن تے تہ ی بقرپر کی کنسنت ُسیی حش تے ے اپیا میاپر کیا اوڑ یری ڑندگی و ندل‬

‫ہ‬
‫ھ‬
‫دالا اوڑ حت ت ی بہ کنسنت منن سنیا بو میرا ڑو ڑو کر ُپرا جال ہوجانا تھا ۔ انک دن ت ی سہادت‬
‫گ‬
‫م‬
‫گ‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫امام حسنن ڑصی ال ّٰلہ عتہ کی کنسنت منن ُسن ڑہا تھا کہ میرے والد ماجد ر ن ا ے ات ون‬
‫م‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ن‬
‫مل‬
‫ک‬
‫لگ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫س‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫تے حت ے بہ نسنت ُ ن ے و تے د ھا بو بوح ے ے کہ ننیا ہان سے ات و بہ نسنت ن ؟ بو‬
‫مح‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ان کو پیانا کہ قلان ملک صاحت کے صاحت ڑادے سے م ی ہنن ‪ ،‬بو تھر والد صاحت تے ے پیانا کہ‬
‫ّٰ عل کنس‬
‫ک حض قی م مح سق‬
‫ی‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ل‬
‫ننیا ابسا رو کہ رت لہ ولانا مد ع اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ا لہ تہ کی ش لاس رو اوڑ‬

‫نک‬
‫ھ‬
‫ان کی بقرپرپن ُسیا کرو اوڑ سنو د ھو میرے کاعدات کے نکش منن ت ی ننن جاڑ بقرپرپن مولانا‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ی‬
‫ت‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫صاحت کی ڑ ی ونی ن وہ ی ے و ن ان و تہت نیھال ر ڑ یا صابع بہ و تے دپیا ۔‬
‫ک‬
‫کس‬
‫منن خوسی خوسی گیا کاعدات کا نکش ھولا بو اس منن جاڑ ن ینن تھنن انک حضرت سیدنا عوت‬
‫ع‬
‫ا ظم کے موضوع پر اوڑ دو واقعہ معراج پر انک سیرت النیی ( ﷺ ) کے موضوع پر وہ منن تے لے‬
‫ہ‬
‫کس‬
‫لنن اوڑ انک ی دن منن جاڑون کی جاڑون ُسن لنن ۔ ات منن تے حضرت کی ن ینن حمعہ کے‬
‫دن کرنلا والی اوڑ واقعہ معراج والی جا تے کے ہونلون منن اوڑ مسجدون منن لگوانا سروع کردپن‬
‫م‬
‫م‬
‫ح‬
‫ح‬
‫م‬
‫مس‬
‫مس‬
‫ی‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ت‬
‫م‬
‫ک‬
‫۔ ے ناد ے کہ اس وقت ے جد ے امام تے ے ع ردنا کہ ھر اس ولانا کی نسنت جد‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫منن بہ لگانا ۔ ُاس کے ساتھ میری تہت ُبو ُبو َمنن َمنن ت ی ہوگیی ت ی۔ میرے والد صاحت کو‬
‫محھ س‬
‫م‬
‫گُ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ل‬
‫گ‬
‫ل‬
‫پیا جلا بو اتہون تے ے ھانا کہ ننیا ان و ون سے کر لنیا تے کاڑ ے یون کہ بہ م ڑاہ وگ نن‬
‫ہ سم‬
‫ن‬
‫م‬
‫ح‬
‫م‬
‫ک‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫اسی لئے بو منن تم کو ان کے ناس نیھئے سے یع کیا کرنا تھا مگر ُبو ت نن یا تھا ش ن تم و‬
‫تہ سم‬
‫ک سیک‬
‫خ ک پیلیع‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ت‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫ی ھانا جا یا ون کہ ت ے ر و اوڑ ر ان کا ڑَ د رنا و اوڑ بہ و تم و ی حما ت وا ے‬
‫تھ سم‬
‫پیلیع‬
‫ح‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ناڑ ناڑ ا پئے ساتھ لے جا تے ہنن ان کو ی یا جا ے و بو انک یات ش کا نام ی‬

‫حماعت مصیفہ علامہ اڑسد القادڑی ( اندنا ) ہے اس کو پرھو بو ان کے مکر و فرپت سے تحے ڑہو گے ۔‬
‫ہ ع‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫بہ کیات والد صاحت کی تہت پری لاپت ڑپری منن موخود ت ی بکال کر پر ی بو تہت ی حیت و‬
‫ع‬
‫پیل ع‬
‫پیل ع‬
‫لگ‬
‫عرپت ی اس کیات ی ی حماعت منن دبوپیدی مولوبون اوڑ ی ی حماعت کی کیابون کے حیت‬
‫سم‬
‫ع‬
‫و عرپت خوا لے پر ھئے کو ملے اس کیات کو پرھ کر منن حیت شش و پیخ منن پر گیا حھ تہنن‬

‫ھ‬
‫انی ت ی کہ سخ کیا ہے اوڑ حھوت کیا ہے ؟ جیر منن تے سوجا کہ کیون بہ ان تمام کیابون کو اکیھا کیا‬

‫جاے اوڑ دنکھا جاے تھر منن تے الگ الگ مقامات سے بہ دبوپیدبون کی اصل کیابون کو حمع کرنا‬
‫ق‬
‫سروع کردنا اوڑ دنکھا بو جدا کی سم وہ ساڑی کی ساڑی عیاڑننن من و عن دبوپیدبون پیلیعیون کی‬

‫کیابون منن ال ّٰلہ اوڑ اس کے پیاڑے ڑسول کرتم ﷺ کی سان منن گسیاحیون کی موخود تھنن بو وہ‬
‫ن‬
‫س‬
‫ل‬
‫دن اوڑ اج کا دن ہے ‪ ،‬ا حمد ل ّٰلہ ‪ ،‬دبوپیدبون پیلیعیون کے ساتھ اتھئے نیھئے سے منن تے حی بوبہ کی‬
‫ص‬
‫سم‬
‫ح‬
‫ق‬
‫ح‬
‫ح‬
‫ی‬
‫س‬
‫م‬
‫اوڑ یخ العقیدہ ُ یی ی ( پرنلوی ) پن گیا ۔ نن بہ ھیا ہون کہ بہ ساڑی والد ماجد کی دعا‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫م ق‬
‫ت ی اوڑ حضرت علامہ مولانا قیلہ حصوڑ حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی کرامت ت ی کہ ان کے‬
‫ہ‬
‫پیان سہادت امام حسنن ڑصی ال ّٰلہ عتہ والی بقرپر ُسیی بو میری ڑندگی سے وہاپیت اوڑ گُ م ڑا ی‬
‫م‬
‫ح‬
‫م‬
‫ھ‬
‫بکل گیی اوڑ حضرت کی اواڑ میاڑک تے ے اپیا میاپر کیا کہ نن تے حضرت کی مرند بقرپرون کی‬
‫کنسنیون کو ادھر ُادھر دکابون سے خرندنا سروع کیا ۔‬

‫ص‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ق‬
‫س‬
‫م‬
‫ک‬
‫س‬
‫ک‬
‫ل‬
‫س‬
‫ا حمد ل ّٰلہ اج اگر منن یخ طوڑ پر ُ ّٰیی اوڑ یخ مان ہون بو جدا بعالی کی م ھاکر ہیا ہون وہ‬
‫ضرف اوڑ ضرف حضرت قیلہ اوکاڑوی صاحت کو ُسن کر اوڑ حضرت قیلہ حصوڑ کی کیاننن پرھ کر‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ہون ۔ ا حمد ل ّٰلہ تم ا حمد ل ّٰلہ اج میرے ناس حضرت کی تمام کی تمام ادبو اوڑ ودبو بقرپرپن اوڑ‬

‫کیاننن موخود ہنن ۔ منن حضرت کو اپیی ڑندگی منن دنکھ بو تہنن سکا مگر ان کی فرمانی ہونی تمام‬

‫بقرپرپن ادبو کنسنیون کی ضوڑت منن ُسن کر اپیا اتمان اوڑ عقیدہ مصیوط کرحکا ہون اوڑ بہ منن‬
‫سم‬
‫گ ہ‬
‫ح‬
‫م‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ع‬
‫م‬
‫پ‬
‫گ‬
‫ن‬
‫ق‬
‫ھ‬
‫یا ون کہ ا ر اج ن سلک ق ا ل س ّٰنت ر قاتم ون اوڑ ند یدگی و م ڑا ی سے تجا ُ وا‬
‫م‬
‫م ق‬
‫ہون بو ال ّٰلہ و ڑسول کی مہرنانی کے بعد حضرت قیلہ حصوڑ حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی حھ‬
‫بہ حصوصی ڑحمت اوڑ بظرکرم ہے کہ حن کے حطات کو سن کر اوڑ کیابون کو پرھ کر اج منن عسق‬
‫ڑسول ﷺ سے سرساڑ ہون ۔‬

‫م‬
‫م ہ ہ م سم‬
‫ح‬
‫ح‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫قاڑننن کرام ! ے بو حضرت صاحت سے تے اپیہا یت ے ی گر نن ھیا ون کہ حضرت کی‬
‫ک‬
‫ھ م‬
‫ت ی حھ پر تہت سققت و عیاپت ہے ۔ قصہ حھ بون ہے کہ منن ا پئے دل منن بہ تہت سدت‬
‫م‬
‫م کم‬
‫تھ‬
‫ح‬
‫ح‬
‫پ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ک‬
‫سے وس یا رنا تھا کہ ناڑ بہ ُسیا ے کہ ش ولی ے ساتھ اد ی و یت ونی ے وہ ا یی دند ی‬
‫ھ‬
‫اس ابسان کو کرانا ہے ۔ انک جلش سی ت ی ‪ ،‬اس کو منن تہت عرصہ نک سوحیا ڑہیا تھا اخر ال ّٰلہ‬
‫مح‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ن‬
‫بعالی کی مہرنانی سے اوڑ حصوڑ ناک ﷺ کی کرم بواڑی سے حضرت تے ے ‪0004‬ء ن اپیا دنداڑ‬
‫ک‬
‫عطا فرمانا ۔ وہ خوات حھ اس طرج تھا کہ انک تہت پری خوت ضوڑت مسجد ہے اوڑ اس مسجد‬
‫مصطق‬
‫م‬
‫گ‬
‫پ‬
‫ن‬
‫منن حضرت پیان کرڑ ہے ہنن حش کا عیوان تھا ادت ی (ﷺ ) اوڑ اس رو رام ن‬
‫ہراڑون لوگ پرے ادت اوڑ جاموسی سے حضرت کو ُسن ڑ ہے تھے اوڑ اسی احیماع منن بہ گیاہ‬
‫من خ س م جن تھن ض‬
‫نک کھل‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫خ‬
‫ی‬
‫م‬
‫ط‬
‫گاڑ ت ی موخود تھا ۔ ا ھ ی بو دل ن و ی کی و ن ن بو خ اتھا وات ے یا ر‬

‫نک‬
‫ل‬
‫ا ھون منن تھے ا حمد ل ّٰلہ وہ ‪0004‬ء کا سال اوڑ ات ‪2802‬ء کا سال کہ خوات منن دنکھا‬
‫ھ‬
‫ہوا حضرت کا بوڑانی حہرہ ات ی نک دل و دماع منن تھول کی خوس ُبو کی طرج ڑجا بسا ہے ۔‬

‫م‬
‫بہ حیضر جالات تھے خو منن تے تجرپر کئے ہنن میرے والد ماجد فرمانا کر تے ہنن کہ اہل س ّٰنت‬
‫ھ‬
‫م ق‬
‫منن اوڑ ت ی تہت سے علما گرڑے ہنن اوڑ موخود ہنن مگر جنسے حضرت علامہ حمد س یع اوکاڑوی‬
‫کس م ہ ہ م‬
‫ح‬
‫جس‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تھے ان ن ی خوپیان اج نک ی نن ت نن نن ۔ ے ناد ے کہ حت حضرت‬

‫علامہ مولانا صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ہماڑے علا قے پرہ ڑنی سربف منن اے تھے بو اس وقت منن‬
‫سم‬
‫ح‬
‫ھ‬
‫بقرپیا سات سال کا تھا منن بو اس پروگرام منن نا ی کی پیا پر بہ جاسکا مگر ہماڑے گاؤن‬
‫نک‬
‫ع‬
‫عوڑ سیی اوڑ مرند ادھر ُادھر کے علاقون سے ہراڑون لوگ حضرت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کو د ھئے اوڑ ُسنئے‬
‫پرہ ڑنی سربف اے ہو تے تھے ۔ وہ سال عالیا ‪0002‬ء کا تھا اوڑ حضرت کی بقرپر کا موضوع‬
‫نن گ‬
‫بعط مص‬
‫طق‬
‫ط‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫ع‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ف‬
‫ض‬
‫یم ی ( ﷺ ) تھا ۔ یت ناساڑ و تے ے ناو ود رت تے ن ن ے حطات رمانا تھا‬
‫ن‬
‫اوڑ پرہ ڑنی سربف دتہات ہو تے کے ناوخود ہراڑون لوگ اخر نک حضرت کو ُسنئے کے لئے نیھے‬
‫ڑ ہے تھے ۔ ہماڑے گاؤن کے پرے بوڑ ھے لوگون کا کہیا تھا خو حضرت قیلہ مولانا کی بقرپر کے‬
‫ہ‬
‫دوڑان موخود تھے کہ حضرت کی بقرپر کے دوڑان لوگون کا حوم خو ہم تے دنکھا ہے وہ ڑندگی منن‬
‫بس ہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫م‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ط‬
‫ق‬
‫ساند ی ابسا ن م تے د ھا و۔ اوڑ ب ر ر ا ی کہ ن مدبون ناد ڑ ے گی ۔ ا ی رج‬

‫س‬
‫ق‬
‫ہماڑے گاؤن کے انک اوڑ حص عیدالقادڑ صاحت کیات فروس ( مر نک دبو کے مالک ) کا پیان ہے‬

‫کہ حت ہم کراحی منن ُہوا کر تے تھے بو ہم تہت سوق سے حضرت کے پروگرام ُسنئے ضروڑ جانا کر تے‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫م‬
‫تھے ۔ اس اد ی کا پیان ہے کہ حضرت منن انک جاص نات بہ ت ی کہ ساڑی ڑات ت ی پیان‬

‫ہ‬
‫ہونا ڑ ہے بو ُسنئے والون کو بہ تھکاوت ہوگی بہ بوڑ ہون گے اوڑ بہ ی حضرت پیان کر تے ہوے‬
‫م‬
‫ک م تھ‬
‫ح‬
‫گ‬
‫ّٰ‬
‫ّٰ‬
‫س‬
‫ک‬
‫پ‬
‫عل‬
‫ل‬
‫ل‬
‫تھکاوت وس ر ن ے ۔ بہ ان کی انک جاص را ت ی اوڑ ا لہ بعالی کا ات ڑحمہ ا لہ تہ‬
‫پر جاص الجاص کرم ڑہیا تھا ۔‬

‫اسی طرج ہماڑے تہان امربکا ناڑتھ کیرو لاپیا منن ڑ ہئے وا لے کراحی کے لوگون کا پیان ہے کہ‬
‫ہ‬
‫م ق‬
‫ہماڑی ساڑی ڑندگی خو حوم ہم تے حضرت قیلہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫پروگرامون منن لا ھون ابسابون کا دنکھا ‪ ،‬اج دن نک ابسا حوم ہم تہنن دنکھ سکے بش وہ انک‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫س‬
‫اب ی سحصیت ت ی کہ حش کو اواڑ ت ی ال ّٰلہ بعالی تے پری شش والی دی ت ی اوڑ ُان کی بقرپر‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ھ س‬
‫ت ی اب ی ُپر نانیر ت ی کہ ُسنئے وا لے کے دل منن بقش ہوجانی ت ی ‪ ،‬سامعنن تہت اپر لے کر‬

‫ھ‬
‫جا تے تھے اوڑ وہ اپر ان کا تہان امربکا جنسے ملک منن ت ی اکر تہت عرصہ گرڑ تے کے ناوخود‬

‫ھ‬
‫تہنن ُاپر سکا ۔ کہئے وا لے ت ی کیا خوت کہئے ہنن کہ اس قانی دپیا منن ڑوڑابہ ہراڑون ابسان‬
‫پیدا ہو تے ہنن اوڑ ہراڑون اس دپیا سے گرڑ جا تے ہنن ان کے گرڑ جا تے کے بعد لوگ اتہنن‬

‫ل ک‬
‫تھلاد پئے ہنن یکن حھ لوگ ا بسے ہو تے ہنن خو اپیی جدا داد صلاجنیون کی وجہ سے ا بسے کاڑنا مے‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫اتجام د پئے ہنن کہ لوگ ان کے گرڑ تے کے بعد ت ی اتہنن ناد ڑ ھئے ہنن ۔ ان کی نادپن عرصہ‬
‫ع‬
‫دڑاڑ نک لوگون کے دلون منن قاتم ڑہیی ہنن اوڑ ناڑ تخ ان کے طیم کاڑنامون کی وجہ سے اتہنن‬

‫ک‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ھ‬
‫س‬
‫ع‬
‫سک‬
‫ط‬
‫س‬
‫ح‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ی‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ب‬
‫م‬
‫م‬
‫ی فرا وس ت نن کر یی ‪ ،‬ا ی ی یم نیون نن انک ناقا ل فرا وس صیت حضرت‬
‫ھ‬
‫م ق‬
‫علامہ مولانا قیلہ حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تھے ۔ حطیت ت ی ا بسے کہ حن پر حطاپت ناڑ‬
‫کرنی ہے ۔ انداڑ پیان حضرت کا اس قدڑ دل کش اوڑ دل بسنن ہونا تھا کہ مجالف ُسنئے سے‬
‫سم‬
‫گ‬
‫ھیرا تے تھے اوڑ حصوصا وہانی دبوپیدبون تے ا پئے ساگردون کو بہ حھانا ُہوا تھا کہ پرنلوی حش‬
‫ہ‬
‫م ق‬
‫عالم کو جاہو ُسنو منن پروا ہ تہنن مگر اہل س ّٰنت کے حضرت علامہ مولانا قیلہ حمد س یع اوکاڑوی‬
‫ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی بقرپر تہنن ُسنیا کیون کہ ان کا پیان خق اپر کئے بعیر تہنن ڑہیا ۔ وہ لوگ ا پئے‬
‫پ پ س ئ می ک ہن ک‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ض‬
‫ساگردون کو اج ت ی حضرت کی بقر ر ن ُ ن ے سے ع ر تے ن کہ ن رت لامہ اوکاڑوی‬

‫کی بقرپرون منن د پئے ہوے دبوپیدبون ‪ ،‬وہاپیون پیلیعیون کے خوا لے ہماڑے گُ م ڑاہ ساگردون کو‬
‫اصل حقیقت کا ڑاستہ بہ دکھادپن اوڑ وہ دبوپیدی وہانی مسلک بہ حھوڑدپن ۔‬

‫م ق‬
‫حضرت قیلہ علامہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ حطاپت کا اقیات تھے ۔ حطیت‬

‫ع‬
‫ا ظم ناکسیان کا لقظ ان پر صادق تھا ۔ ملک کا کون سا سہر نا کوجہ ابسا ہے حہان اتہون تے مسلک‬
‫خق اہل س ّٰنت و حماعت اوڑ پیاڑے اقا حصوڑ ﷺ کا پیعام خق بہ تہیجانا ہو ۔ ات اسمان حطاپت‬

‫ھ‬
‫ھ‬
‫کے ڑحسیدہ اقیات تھے ۔ اقیات ت ی ا بسے کہ حش کے دپیا سے حھت جا تے کے بعد ت ی اس کی‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫کرننن سمیون منن ڑوسیی کرڑ ی ہنن ۔ ابسا اقیات ساند ی دوناڑہ طاہر ہوسکے نا کونی مان‬
‫ہ س‬
‫م ق‬
‫حضرت جنسا عالم پیدا کرسکے ۔ حضرت قیلہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی جنسا دپیا منن انک ی حص‬
‫ہ‬
‫اس صدی منن پیدا ہوا تھا اوڑ ا گے ساند ی کونی مان ات جنسا عالم َحن سکے ۔‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫حضرت کی سان ت ی کیا خوت کہ اج اس دپیا منن ان کا وخود بو تہنن ہے یکن حیہون تے ُسیا نا‬
‫م ق‬
‫دنکھا بو ان کے دل بہ ما پئے کے لئے قطعا پیاڑ تہنن ہنن کہ حضرت قیلہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی‬

‫ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ اس دپیا سے پردہ کر گئے ہنن ۔ منن تے ُسیا ہے کہ حت ‪0002‬ء منن حضرت مولانا‬
‫م ق‬
‫حمد س یع اوکاڑوی ہماڑے گاؤن پرہ ڑنی سربف منن اے تھے بو اڑد گرد علاقون کے تمام حھو تے‬
‫نک‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫پرے علما ت ی ات کو ُسنئے اوڑ د ھئے کے لئے گئے تھے ان ی علماے کرام منن علاقہ ح حھ گاؤن‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ع م‬
‫ھ‬
‫عوڑ سیی کے طیم قیی میان عیدا حق صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ت ی تہت ڑنادہ کم ڑوڑی اوڑ ڑنادہ‬
‫ل‬
‫ع‬
‫مر کے ناوخود جلشہ منن بسربف لے گئے تھے ۔ ان کی اولاد تے حضرت اسیاد میان عیدا حق صاحت‬
‫ہ م‬
‫کو تہت ی یع کیا تھا کہ ات بہ جاننن کیون کہ ات پیماڑ ہنن مگر حضرت میان صاحت تے اپیی‬

‫ھ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫اولاد کو فرمانا تھا کہ ات ی بو منن اتھ ننیھ سکیا ہون اگر منن اس سے ت ی ڑنادہ لاجاڑ ہونا بو ت ی‬
‫م‬
‫م‬
‫ت ہنن کہیا کہ منن وہان جاؤن گا اوڑ ان کی بقرپر ُسنون گا ۔ نالاخر اولاد تے ان کو حیوڑا اجاڑت‬
‫م ق‬
‫دے دی ۔ حضرت میان صاحت پرہ ڑنی سربف تے جلشہ گاہ منن جاکر حضرت مولانا حمد س یع‬

‫اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی تمام بقرپر کو دبواڑ کے ساتھ پیک لگاکر ُسیا اوڑ فرمانا تھا کہ ال ّٰلہ بعالی دپیا‬
‫ھ‬
‫م ق‬
‫منن اہل س ّٰنت کو اگر اوڑ ڑنادہ علما بہ ت ی دے بو اس کی مرصی ۔ مگر ال ّٰلہ بعالی مولانا حمد س یع‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ی کو تہت دپر نک ڑندہ ڑ ھے بو بہ تمام علما اہل س ّٰنت سے ڑنادہ اس دپیا‬
‫م‬
‫پق‬
‫م‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ق‬
‫س‬
‫م‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫م‬
‫منن کام کرسکئے ہنن اوڑ ا حمد ل ّٰلہ ے ا ل س ّٰنت نن ولانا مد ع اوکاڑوی ر جر ے اوڑ ش‬

‫مس کیھ تھ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ت‬
‫ن‬
‫سک‬
‫ض‬
‫مکنتہ قکر منن مولانا اوکاڑوی جنسے علما ہون وہ لک ی ی یم ن و یا ۔ بہ رت‬
‫ع‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫میان عیدا حق عوڑ سیی کے القاط تھے خوکہ خود ت ی تہت پرے عالم قاصل اوڑ اسیاد الاساندہ‬
‫ل‬
‫تھے ۔ ات تے انک سو سولہ ( ‪ ) 002‬سال کے ہوکر اس دپیا سے پردہ کیا ۔ ’’ کیانی سلسلہ ا حطیت‬
‫ل‬
‫‘‘ کے قاڑننن کرام کو حضرت میان عیدا حق صاحت کے جالات ڑندگی ڑنادہ جا پئے کی ضروڑت ہو بو‬
‫وہ حہان ڑصا لاہوڑ سماڑہ ‪ 000‬دسمیر ‪2808‬ء ضقحہ ‪ 50‬کو ملاحطہ فرماننن ۔‬

‫اسی طرج انک دوسرے عالم ناکسیان کے علاقہ گوخر جان کے ڑ ہئے وا لے اج کے موخودہ دوڑ کے‬

‫تہت خوت ضوڑت اوڑ دل بسنن انداڑ منن بقرپر کر تے وا لے حضرت علامہ مولانا قاڑی ظہوڑ‬
‫م ق‬
‫احمد حسیی صاحت تہان امربکا اے بو نابون نابون منن حضرت قیلہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ‬
‫ق‬
‫ال ّٰلہ علتہ کا دکر جیر اگیا بو قاڑی صاحت فرما تے لگے کہ ساہ صاحت حت حضرت مولانا س یع‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ڑندہ تھے بو حت جلشہ منن کونی پروگرام ہوڑہا ہونا تھا بو حوم پرفراڑ ڑ ھئے‬
‫نک‬
‫ھ نک‬
‫کے لئے تمام علما کی بقرپر کے بعد حضرت کی بقرپر ہونی ت ی ۔ د ھئے وا لے د ھئے تھے اوڑ ُسنئے‬

‫ھ‬
‫ھ‬
‫وا لے ُسنئے تھے کہ تمام بقرپرون کے بعد حضرت کی وہ واجد بقرپر ہونی ت ی خوکہ دل بسنن ت ی‬
‫کہ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ہونی ت ی اوڑ دل پر اپر کر تے والی ت ی ۔ اسی طرج اتہون تے انک دوسری نات ی اگر‬

‫م ق‬
‫حضرت مولانا حمد س یع اوکاڑوی کراحی منن بہ ا تے بو بقنن جا پئے کہ بوڑا کراحی دبوپیدی وہاپیون‬
‫کے قیصے منن ہونا ۔ کراحی منن ڑ ہئے وا لے نا کام کر تے وا لے علماے اہل س ّٰنت حضرت قیلہ‬
‫م ق‬
‫مولانا حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا احسان ماننن کہ وہ اج دپیا منن تہنن ہنن مگر کراحی‬
‫م ق‬
‫منن اہل س ّٰنت کے لئے ڑاہ ہم وَاڑ کر تے وا لے بہ پرڑگ حضرت قیلہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی‬

‫ہ‬
‫ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ی تھے اوڑ مولانا اوکاڑوی صاحت ا پئے َدوڑ کے واجد عالم دپن تھے حن کے انک انک‬
‫ھ‬
‫دن منن حھ حھ سات سات پروگرام ہو تے تھے کہ ال ّٰلہ بعالی تے ان کو اپیی عرت دی ہونی ت ی‬
‫ل‬
‫ل‬
‫۔ ا حمد ل ّٰلؒہ ع ی دالک ۔ بہ تھے وہ ناپرات خوکہ مولانا قاڑی ظہوڑ احمد حسیی صاحت گوخر جان‬
‫کے ڑ ہئے وا لے امربکا منن اکر د پئے تھے ۔‬

‫م‬
‫کل‬
‫انک ننسری سحصیت حیات حضرت مولانا قاڑی جاقظ حمد امنن صاحت جال امربکا ی ی قوڑپیا‬

‫ڑاپیو اوک فرما تے ہنن کہ بقرپر کے علاوہ تجرپر منن جنیا قاندہ اج کے َدوڑ منن اوکاڑوی جاندان سے‬
‫ہ ہ م سم‬
‫عل تہ تہ‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫م‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫لوگون کو ت یجا ے نن یا ون کہ ناقی ما سے ن خ سکا اوڑ بہ ی ناقی ماء قاند ن‬
‫حیگ‬
‫ت ی کے لجاط سے عوام اہل س ّٰنت کو اپیا عمدہ اوڑ ڑنادہ تجرپری مواد دے سکے ہنن ۔‬

‫قاڑننن کرام ! ڑاقم کا سماڑ ان لوگون منن ہے کہ حیہون تے حضرت کو طاہری حیات منن دنکھا اوڑ‬
‫سم‬
‫نک‬
‫ح‬
‫م‬
‫ل‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ُسیا تہنن مگر ا حمد ل ّٰلہ دل منن حیت اپیی ڑنادہ ہے کہ د ھئے وا لے بہ ے ن کہ ساند ن ہر‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫وقت حضرت کے ساتھ اتھیا ننیھیا ڑہا ہون ۔ ا حمد ل ّٰلہ اسی حیت کی وجہ سے حضرت قیلہ مولانا حمد‬
‫ق‬
‫س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی سحصیت سے میاپر ہوکر ان کے حطیات کو ُسن کر اوڑ کیابون کو پرھ کر‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ت‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ک‬
‫خ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫س‬
‫ض‬
‫م‬
‫س‬
‫ی‬
‫ن ی وق لگا کہ ون بہ تہان ا ربکا ن انک جگہ رند ر رت کی نا یان راحی ن‬
‫ُ‬
‫پیانی ہونی تہت پری خوت ضوڑت جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت کی ساج تہان امربکا منن قاتم کرپن‬
‫نکمی م ہ‬
‫م‬
‫ن‬
‫اوڑ حضرت کے ساتھ بعلق کو اوڑ مصیوط اوڑ بکا کرلنن بو اسی کوشش کی ل نن ن انک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ناہمت اوڑ وقاداڑ دوست کی ضروڑت ت ی بو ال ّٰلہ کی عطا سے منن انک دوست ت ی حیات پیوپر‬
‫اقیال صاحت کی سکل منن ملا اوڑ ال ّٰلہ بعالی کے قصل و کرم سے اوڑ حصوڑ ﷺ کی عطا سے انک‬

‫ھ‬
‫ہ‬
‫تہت ی خوت ضوڑت علا قے منن سات انکر کی تہت پری ڑمنن ت ی مل گیی اوڑ ہم دوبون‬
‫ل‬
‫م ق‬
‫دوسنون تے مل کر اس ڑمنن کو خرندا اوڑ تھر ا حمد ل ّٰلہ اس ڑمنن پر حضرت قیلہ مولانا حمد س یع‬

‫اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی ڑوجانی بوجہ سے اوڑ ان کی ڑوجانی دعاؤن کے صد قے سے اس ڑمنن کو‬
‫ُ‬
‫جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت کے نام سے اناد کر تے کی کوشش کرڑ ہے ہنن‬

‫۔ طاہری طوڑ پر حضرت قیلہ مولانا اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ بو پردے منن ہنن مگر اس جال‬

‫موخودہ َدوڑ منن حضرت کے جلف اکیر ‪ ،‬سجادہ بسنن ‪ ،‬سنیون کے دل و جان ‪ ،‬دپیاے س ّٰنیت کے‬
‫م‬
‫حطیت دی سان حضرت علامہ مولانا قیلہ حصوڑ حمد کوکت بوڑانی اوکاڑوی دامت پرکاتہم العالتہ‬
‫س ہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫خ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ف‬
‫ف‬
‫س‬
‫س‬
‫ب‬
‫ص‬
‫کی سرپر یی ن ر ے ‪ ،‬وہ ود تہان ربف لاے اوڑ ماڑی و لہ ا رانی رمانی۔ ان ے‬
‫ُ‬
‫ڑپر سابہ ان ساء ال ّٰلہ بعالی اس امربکا ناڑتھ کیرولاپیا منن جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت کی ساج پن‬
‫ہ‬
‫ڑ ی ہے۔ ان ساء ال ّٰلہ حضرت قیلہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی کی ڑپر سرپرسیی حت بہ مسجد پن گیی بو‬
‫ُ‬
‫بہ اہل س ّٰنت کے لئے تہت پرے مرکر کی ضوڑت ہوگی اوڑ اس مسجد گل ڑاڑ جنیت امربکا سے ان‬
‫ک‬
‫ساء ال ّٰلہ بعالی ہراڑون لا ھون لوگ قیامت نک خوس تما عقیدون کے ساتھ عاسق ڑسول پن کر‬
‫ہ‬
‫م ق‬
‫بکلنن گے بو اس کا تمام بوات حضرت علامہ قیلہ حصوڑ حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کو ت یحے گا‬
‫ک ہ‬
‫ت ہ‬
‫م‬
‫ق‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫پ‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ق‬
‫ق‬
‫م‬
‫ی‬
‫پ‬
‫ل‬
‫اوڑ ھر ن ن ے کہ یا ت ے دن ن اوڑ ماڑے دوست و ر ا یال ے گاے وے‬
‫صدقہ جاڑبہ کے سنت حضرت حصوڑ قیلہ اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ہم دوبون کو ا پئے دامن منن‬
‫ہ‬
‫حھیالنن گے ۔ اے کاس ابسا ی ہو۔‬

‫ک‬
‫حضرت قیلہ حصوڑ کوکت بوڑانی اوکاڑوی صاحت دامت پرکاتہم العالتہ بہ حھ حید ضقجات منن تے‬
‫لک‬
‫لک‬
‫م‬
‫ھ‬
‫حضرت کی حیت منن ھے ہنن ‪ ،‬ھئے کا دھیگ بو تہنن انا مگر تھر ت ی ان تمام ضقجات کو پرھ‬

‫ص‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ق‬
‫م‬
‫ض‬
‫کر یخ فرماکر ا حطیت کے جات نن جگہ دے دپن بہ حضرت کی کرم بواڑی ہوگی تجرپر کی‬
‫علطیون پر معاقی کا طلت گاڑ ہون۔‬

‫ل‬
‫سید میوڑ ع ی ساہ تجاڑی قادڑی ڑضوی‬
‫ہانی بواپیت ‪ ،‬ناڑتھ کیرولاپیا ۔ بو ابش اے‬

‫ّٰ‬
‫بسم اللہ الرحمن الرحیم‬

‫مساہدات و ناپرات‬
‫ال ّٰلہ بعالی کے لئے ست بعربقنن ہنن خو کاپیات کے د ّٰڑے د ّٰڑے ‪ ،‬قظرے قظرے اوڑ پ ّٰئے پ ّٰئے کا‬
‫ک‬
‫م مصطق‬
‫ڑت ہے ۔ لا ھون کروڑون ُدڑود و سلام حضرت حمد ی ﷺ پر خو کاپیات کی ہر جیر کے لئے‬

‫ڑسول پرخق پن کر بسربف لاے ۔ حمد و صلوہ کے بعد ال ّٰلہ ڑت العرت جل جلالہ تے اس کاپیات‬
‫عل‬
‫منن ابسابون اوڑ حیون کی ہداپت کے لئے انک لاکھ خوننش ہراڑ کم و ننش اننیاء یہم السلام کو‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ھ‬
‫ی‬
‫ت‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ن‬
‫میعوت فرمانا ۔ ست سے اخر منن ال ّٰلہ بعالی تے حصوڑ پیی کرتم ﷺ کو جاتم ا ن پیا ر یجا اوڑ‬
‫پیوت کا نات ال ّٰلہ بعالی تے سرکاڑ دو عالم ﷺ کی دات پر پید فرمادنا ۔ ات کے بعد کونی پیی قیامت‬
‫نک تہنن اے گا ۔‬
‫یل‬
‫ال ّٰلہ بعالی تے فران و جدپت کی پ یع کے دڑ بعے اس کاپیات منن ُڑسد و ہداپت کا پیعام عام کر تے کے‬
‫ل‬
‫لئے بہ فربصہ اولیاے کرام و علماے ّٰڑنانی کے ُسیرد فرمانا ۔ صجابہ کرام ( خوکہ ولاپت کے اع ی‬

‫دڑ حے پر قاپر ہنن ) سے لے کر اج نک اوڑ اج سے قیامت نک بہ فربصہ اولیاے کرام علماے ّٰڑنانی‬
‫ق‬
‫ھ‬
‫اتجام د پئے ڑہنن گے ۔ ہر َدوڑ منن حت ت ی قنیون تے سر اتھانا بو اس کے قلع مع کے لئے ال ّٰلہ بعالی‬
‫کس‬
‫تے ا پئے ی مقیول پیدے کو اس دپیا منن تھیجا ۔ گرستہ صدی منن حت طرج طرج کے قنئے اتھر‬

‫ل‬
‫ع‬
‫کر سا مئے اے بو ال ّٰلہ بعالی تے اع ی حضرت ‪ ،‬طیم الیرکت ‪ ،‬مج ّٰدد دپن وملت مولانا ساہ احمد ڑصا‬
‫جان پرنلوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی دات کو پیدا فرمانا ۔ ات تے تمام ندعات کو میا تے اوڑ ہر قنتہ‬
‫قض‬
‫نل‬
‫جکرالوی ‪ ،‬دبوپیدی ‪ ،‬وہانی ‪ ،‬مرڑانی ‪ ،‬ڑا ی اوڑ جاڑحی جنسے فرقون کا ڑد یع فرمانا اوڑ مردہ‬
‫س ّٰنیون کو ڑندہ فرمانا ۔‬

‫عل‬
‫ع‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ظ‬
‫م‬
‫س‬
‫ح‬
‫ک‬
‫م‬
‫ط‬
‫ص‬
‫ات ی علماے ّٰڑنانی منن سے انک ی اوڑ ڑوجانی یت ح یت ا م نا سیان ‪ ،‬ج ّٰدد سلک‬
‫م ق‬
‫اہل س ّٰنت ‪ ،‬عاڑی ملت ‪ ،‬امیر اہل س ّٰنت حضرت علامہ مولانا حمد س یع صاحت اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ‬
‫ھ‬
‫یل‬
‫علتہ کی دات ت ی ہے ۔ ات تے ناکسیان کے کو تے کو تے اوڑ دپیا کے اطراف منن جگہ جگہ پ یع‬

‫نی کھ تھ‬
‫اسلام کا فربصہ اتجام دنا ۔ ال ّٰلہ بعالی تے ان کی حطاپت منن وہ نا ر ڑ ی ی کہ ی حطانات‬
‫م‬
‫ہ مس ق مسنق‬
‫ل‬
‫ج‬
‫م‬
‫ی‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ت‬
‫سے عوام و خواص ست ی ن ید و ص و تے ے ۔ ات ے حطات کی ش ن ا ّٰول سے‬
‫م‬
‫ع‬
‫اخر نک انک حیت کیف ہونا تھا ۔ سامعنن اپیا طونل حطاتسنئے ہوے تھکاوت حسوس تہنن‬
‫ھ‬
‫کر تے تھے نلکہ کیقیت بہ ہونی ت ی کہ علامہ اوکاڑوی علتہ الرحمہ ساڑی ڑات حطات فرما تے‬
‫علم‬

‫ڑہنن اوڑ ہمسنئے ڑہنن۔ ال ّٰلہ بعالی تے علامہ اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کو تے سماڑ خوپیون سے بواڑ ڑکھا‬
‫ل‬
‫تھا ۔ حن کا پیان تہنن ہوسکیا یکن حید خوپیان خو میرے ساتھ مساہدے منن اننن ان کو منن‬
‫تجرپر کرنا ہون ۔‬

‫ہ م‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ح‬
‫س‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ض‬
‫حیت ‪ :‬ات کا اجلاق اپیا نلید تھا خو ت ی ان سے ملیا تھا ہر انک ت ی وس رنا تھا کہ رت *‬
‫مح ک ہن محھ حض جل ض عل‬
‫م ہ‬
‫حس‬
‫علامہ صاحت حھ سے ی ڑنادہ یت ر تے ن ۔ ے رت یفہ وقی ی ن صاحت (‬
‫جلیفہ مجاد دڑناڑ عالتہ موہرا سربف ) کالا نل جامع مسجد بطیربہ کے نانی کی معیت منن کیی ناڑ اوڑ خود‬
‫ھ‬
‫ت ی کیی ناڑ حطیت ناکسیان کے دولت جا تے پر جاضری کا سرف جاصل ہوا ۔ قیلہ جلیفہ صاحت‬
‫م‬
‫م‬
‫ھ‬
‫سے اوڑ حھ ناجیر سے تہت حیت اوڑ سققت فرما تے اوڑ دعاؤن سے ت ی بواڑ تے ۔ ناد ڑ ہے کہ‬

‫ع‬
‫اج کل بطیربہ جامع مسجد کی حطیت ا ظم ناکسیان علامہ اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے لحت جگر‬
‫‪ ،‬بوڑ بظر ‪ ،‬حضرت علامہ مولانا داکیر کوکت بوڑانی اوکاڑوی صاحت مد طلہ العالی سرپرسیی‬
‫فرماڑ ہے ہنن ۔‬

‫ل‬
‫ُ‬
‫مسجد بطیربہ پرست کے حییرمنن و سرپرست اع ی ہنن ۔ جامع مسجد بطیربہ کا جامع مسجد گل ڑاڑ‬

‫ع‬
‫ھ‬
‫جنیت سے الجاق ہے ۔ ات مسجد کی مالی اعاپت ت ی فرما تے ہنن ۔ حطیت ا ظم ناکسیان علتہ‬
‫ھ‬
‫الرحمہ کے ادنی علام کی حینیت سے ان کے شہ ڑادے ت ی ہم ست پر سققت فرما تے ہنن ۔‬

‫عل‬
‫ھ‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫ل‬
‫م‬
‫ت‬
‫س‬
‫س‬
‫ق‬
‫م‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ن‬
‫علامہ اوکاڑوی کے ی مالات ‪ :‬ات ے سے ن جا ن ی ل سے ل سوال *‬

‫کر تے تھے جنسے ات کے ناس سوالون کا پرجہ انا ات فران و جدپت سے پرحستہ ابسا مدلل خوات‬

‫م‬
‫ک‬
‫ق‬
‫س‬
‫ح‬
‫م‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫عل‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ج‬
‫د پئے تھے ۔ حھ بون وس ونا نسا کہ ات و ت ے سے وم تھا کہ اس م ے تے حیدہ‬

‫سوالات ہون گے اوڑ ات پیاڑی فرماکر جلسے منن بسربف لاے ہنن۔ منن تے تہنن دنکھا کہ‬

‫سل‬
‫خوات د پئے منن ب سل بونا ہو ۔ اکیر ہم جنسے طالت علم تہت اسنقادہ کر تے کیی احیلاقی مسانل‬
‫کے خوات حضرت سے سن کراج نک ہماڑے دل و دماع منن بقش ہنن ۔‬
‫کس‬
‫ات کی دلیرابہ خرأت ‪ :‬ات تہت دلیر اوڑ ندڑ تھے کہ سواے ال ّٰلہ بعالی کی دات کے ی سے *‬

‫کس‬
‫تہنن دڑ تے تھے ۔ ات ی مجالف اوڑ دسمن سے تہنن دڑ تے تھے ۔ عسق ڑسول مقیول ﷺ‬

‫منن سرساڑ ہوکر دسمیون کے پر عے منن خق پیان فرما تے تھے اوڑ بہ خوف تہنن ہونا تھا کہ کونی‬
‫مجالف دسمن ات کو بقصان تہیجادے گا ۔ اس کی انک میال ات کے سا مئے منن پیان کرنا ہون‬
‫م ل‬
‫کہ کھاڑادڑ کاعدی ناڑاڑ منن انک سال ‪ ،‬جرم ا جرام کے جلسے منن سہادت کا پیان فرماڑ ہے تھے‬

‫ھ‬
‫کہ ات کا حطاتسنئے وا لے ہراڑون تھے ‪ ،‬لوگ ُدوڑ ُدوڑ سے ت ی اے تھے اوڑ جد بگاہ نکسنئے‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫والون کے سر ی سر بظر اڑ ہے تھے ۔ نلدنگون ‪ ،‬مکابون کی حھیون پر ت ی لوگ ننیھ کر ات کا‬
‫م‬
‫گ‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ت‬
‫ط‬
‫حطاتسنئے تھے ۔ اجانک جلسے منن تھگ دڑ خ یی ۔ وگ شہ گاہ سے اس رج تھاگ ا ے‬
‫نک ہ نک‬
‫کس‬
‫جنسے ی دسمن تے حملہ کردنا ہو ۔ د ھئے ی د ھئے پیدال ( جلشہ گاہ ) جالی ہوگیا ۔ کیقیت بہ‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ت ی کہ لوگ اپیا ضروڑت کا سامان ت ی ساتھ لے جانا تھول گئے ۔ اپیا ی پردے منن خواننن کا‬
‫ھ‬
‫احیماع ہونا تھا خو کہ دکر سہادتسنئے کے لئے سرنک جلشہ ہونی تھنن ۔ خواننن ت ی ا پئے پر قعے‬

‫گ‬
‫گ‬
‫‪ ،‬دو پئے ‪ ،‬جادڑوپن لنیا تھول ینن اوڑ دڑ کے ماڑے تھاگ ینن ۔ ُدوڑ ُدوڑ لاؤد اسنیکر لگے ہو تے‬
‫ھ‬
‫تھے ۔ ات کی اواڑ تہت ُدوڑ نک سیانی دپیی ت ی۔ تحقیق کر تے پر معلوم ہوا کہ انک مکان کی‬
‫ک‬
‫م‬
‫حھت پر ننیھا اد ی اجانک پیحے گر پرا اوڑ حت وہان لوگ اتھ ھرے ہوے بو ساڑے جلسے کے‬
‫ل ّٰ عل س سنی پ پ ک س پ ن‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ی‬
‫لوگ اتھ کر تھاگ گئے حت کہ علامہ اوکاڑوی ڑحمہ ا لہ تہ ند نوڑ ا خ ر ا یی ر ی ر ے‬

‫ڑ ہے اوڑ ناڑ ناڑ اعلان فرماڑ ہے تھے کہ لوگو تھا گئے کی ضروڑت تہنن دسمن اگر واڑ کر ے گا بو‬
‫م‬
‫ن‬
‫ست سے تہلے حھ پر واڑ کرے گا ۔ دسمن اگر ہے بو میری جان کا دسمن ہے ۔ ات پیدال منن نیھے‬
‫س‬
‫ڑہنن مگر حقیقت جال معلوم ہونی بو ات تے تھر اعلان فرمانا کہ کونی اب ی نات تہنن ات اس‬

‫جلشہ گاہ منن بسربف لاننن ۔ حیان جہ تھوڑی دپر کے بعد پیدال لوگون سے تھر تھر گیا بو ات تے‬
‫ہ ق‬
‫کس‬
‫گ‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ی‬
‫پ‬
‫سامعنن سے مجاطت ہوکر فرمانا معلوم ہونا ہے کہ میر ات ی خ ر ن ے ۔ ات ا ے تہادڑ اوڑ‬
‫س‬
‫ن‬
‫س‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫ی‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫گ‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ت‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ی‬
‫ن‬
‫ع‬
‫ف‬
‫ح‬
‫دلیر تھے کہ ات ا خ وڑ ر ن ے نلکہ ناڑ ناڑ و ون و ا ر ر ا لان رما تے ڑ ے کہ ات‬
‫پیدال بہ حھوڑپن ۔‬
‫کس‬
‫ات کی نادداست ‪ :‬اگر ی تے ات سے ڑندگی منن انک ناڑ ملاقات کا سرف جاصل کیا ہے بو تھر *‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ل‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ق‬
‫م‬
‫ت‬
‫کنیا ی لمیا عرصہ گرڑ جانا تھر ی لاقات ن ی ونی بو ات اس و جان ن ے کہ لان‬
‫ھ‬
‫جگہ ات سے ملاقات ہونی ت ی ۔ انک دقعہ کا دکر ہے اس وقت عالیا علامہ اوکاڑوی صاحت ڑحمہ‬
‫ھ‬
‫ال ّٰلہ علتہ جامع مسجد بوڑ منن تماڑ حمعہ پرھا تے تھے اوڑ بہ ت یسنئے جلنن کہ حضرت علامہ مولانا‬

‫داکیر کوکت بوڑانی صاحت اوکاڑوی حطیت ملت اوڑ ات کے حھو تے تھانی پرادڑ مکرم حیات داکیر‬
‫م‬
‫حمد سیجانی کو حطیت ناکسیان ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ا پئے ساتھ جامع مسجد بوڑ حمعہ کے دن لے جا تے تھے ۔‬
‫ک‬
‫ک‬
‫حت تماڑ حمعہ کی حماعت ھری ہونی بو حطیت ناکسیان ا پئے دوبون سہرادون کو مسجد کی ھرکی‬
‫م ک‬
‫ھ‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ت‬
‫س‬
‫ھ‬
‫پ‬
‫ح‬
‫منن خو گیجابش ہونی ت ی اس نن را رد ے ے ۔ رے شہ ڑادے یات جامد ّٰڑنانی ان‬
‫دبون تہت کم سن تھے ۔ تہرکیف کہیا بہ جاہیا ہون کہ میرے تھانی ضوقی ڑمصان صاحت بقش‬
‫م‬
‫ل‬
‫ل‬
‫پیدی اوڑ ڑاقم ا جروف ( حمد سربف بقش پیدی ) ہم دوبون ا پئے نیر و مرسد اع ی حضرت ولی‬
‫بعمت ‪ ،‬عوت ڑمان ‪ ،‬قطت دوڑان سیر ساہ عاڑی الجاج نیر ہاڑون الرسید صاحت دامت پرکاتہم‬
‫ح‬
‫العالتہ کی ڑناڑت و ملاقات دڑناڑ عالتہ سربف ت صیل کوہ مری ڑاول پیدی گئے ہوے تھے اوڑ‬
‫ک ہ‬
‫پ مل‬
‫ھ‬
‫م‬
‫ن‬
‫سالابہ عرس میاڑک ت ی تھا۔ سرکت کی سعادت جاصل کر تے ے بعد ن اجاڑت د ر سے ی‬
‫کس‬
‫۔ ا تے ا تے دپر ہوگیی ۔ ہماڑا انانی گاؤن میر بوڑ اڑاد میر تھا ۔ ڑات گیاڑہ تحے پیجات صلع‬
‫ہ‬
‫حہلم دپیا منن ت یحے ۔ تہت پربسان تھے کہ ات کونی ڑات کو جا تے والی گاڑی تہنن ہے ‪ ،‬کیا کرپن‬
‫۔ ا پئے منن ہم دوبون تے مسوڑہ کیا کہ تہلے کھانا کھا تے ہنن تھر تماڑ عساء پر ھئے ہنن اس کے بعد‬
‫نک‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫گ‬
‫ہ‬
‫ّٰ‬
‫ہ‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ک‬
‫د نن ے کہ ات کیا رنا جا ے ۔ اللہ بعالی ت یر فرماے گا اوڑ ماڑے رتم مرسد کی ر ت سے‬
‫کونی تہیر پیدوبست ہوجاے گا ۔‬

‫ہ‬
‫حیان جہ ہم تے تہلے کھانا کھانا ‪ ،‬ساتھ ی ناڑاڑ گیجان انادی دپیا منن انک پری جامع مسجد ہے اس‬
‫م‬
‫م‬
‫مسجد منن مقرڑ دل ندپر قیی نکتہ دان حضرت علامہ قیی عرپر ال ّٰلہ ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ حمعہ کی تماڑ‬
‫پرھا تے تھے حت ہم تماڑ پر ھئے کے لئے دپیا کی جامع مسجد منن گئے ‪ ،‬کیا دنکھا حطیت ناکسیان مجاہد‬
‫ھ‬
‫ملت حضرت علامہ اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ حطات فرماڑ ہے تھے ہم ت ی وضو کر کے تماڑ عساء‬

‫پرھ کر حطاتسنئے ننیھ گئے اوڑ ہم تے ال ّٰلہ بعالی کا سکر ادا کیا کہ علامہ اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ‬
‫علتہ دو دھانی تحے نک حطات فرماننن گے ۔ خون کا مہنیا تھا ‪ ،‬گرمیون منن پیجات منن جاڑ تحے‬

‫ھ ض‬
‫و بسے ت ی یخ طلوع ہوجانی ہے ۔ امید پیدھ گیی کہ ات وعظ کے بعد بقتہ ڑات مسجد منن گراڑ پن‬
‫ق‬
‫ض‬
‫گے ۔ یخ حت طلوع ہوگی بو جر کی تماڑ پرھ کر ا پئے گاؤن کو ڑوابہ ہوجاننن گے ۔ گاڑی اسانی سے‬
‫مل جاے گی ۔ حطات کے اجنیام پر مسجد کی اپیطامتہ تے مدڑشہ ( داڑالعلوم ) کے مالی بعاون کے لئے‬
‫ئم‬
‫ح‬
‫ص‬
‫حطیت ناکسیان سے حیدہ کی اپیل کی دڑخواست کی ۔ حت حطیت ناکسیان تے ا پ ے وص انداڑ‬
‫منن حیدہ کی اپیل سرکاء جلشہ سے کی بو لوگ خوق دڑ خوق حیدہ دپیا سروع ہو گئے ۔ ا پئے منن‬
‫م‬
‫ح‬
‫ق‬
‫س‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ط‬
‫خ‬
‫ی‬
‫م‬
‫ح‬
‫س‬
‫ے و ی ونی کہ یت نا یان سے یری لاقات اسانی سے وجاے گی ۔ حست بو ق حیدہ‬
‫س‬
‫د پئے کے لئے ا نیخ پر تہیجا اوڑ حطیت ناکسیان سے مصاقحہ کر تے کا سرف جاصل ہوا بو حطیت‬
‫م‬
‫ح‬
‫ک‬
‫س‬
‫ح‬
‫ی‬
‫ناکسیان تے جلشہ عام منن اعلان فرمانا کہ کراحی سے ( مولانا ) مد ربف صاحت ات و دہ‬
‫خ مح‬
‫نک‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫د پئے کے لئے اے ہنن اوڑ مسکرا ت ی ڑ ہے تھے ۔ ات کی مسکراہت اوڑ ا ی ملاقات سے و ے‬

‫خوسی اس وقت ہونی وہ القاط منن پیان تہنن کرسکیا ۔ العرص ات کا جاقطہ اپیا قوی تھا کہ منن‬

‫م‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫ق‬
‫ڑہیا بو کراحی منن تھا مگر دپیا منن انک اجنیی جگہ پر اتہون تے ے ت جان یا حت کہ اس و ت‬

‫ھ‬
‫ات سے ملاقات اپیی ڑنادہ بہ ت ی۔ بش علامہ اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا ُپرنانیر ‪ ،‬سیرپن حطات‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ن‬
‫ات کا منیھا منیھا لہحہ دل کو اتمان کی ناڑگی تحسئے والا انداڑجامع مسجد بوڑ منن یخ کر لے جانا تھا ۔‬
‫ناڑ لوگون کی امیدپن ‪ :‬حطیت اہل س ّٰنت ‪ ،‬واعظ خوس پیان حضرت مولانا سییر احمد اظہری *‬

‫سجاع انادی مدطلہ العالی خو عرصہ دڑاڑ سے حیاج مسجد پربش ڑود منن حطاپت کے فرابص اتجام‬

‫ھ‬
‫دے ڑ ہے ہنن ۔ ان سے ت ی دوسیابہ بعلقات ہنن اگر ملاقات منن ڑنادہ عرصہ گرڑ جاے بو‬
‫فرما تے ہنن ( مولانا ) کیا تہت لمئے مرا قئے منن جلے گئے تھے ؟ تہرجال عرص کرنا جاہیا ہون کہ‬
‫علامہ سییر احمد اظہری سجاع انادی تے انک دقعہ حیاج مسجد منن ملاقات کے دوڑان فرمانا کہ حت‬
‫ہ سم‬
‫ح‬
‫حضرت علامہ اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا وصال ہوگیا بو م ھئے تھے کہ اوکاڑوی صاحت کی جگہ‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ات منن لوگ وعظ کے لئے نلانا کرپن گے مگر حت سے علامہ اوکاڑوی صاحت کا اپیقال ہوا منن‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫وعظ کے لئے بوحھیا ت ی کونی تہنن ‪ ،‬ا بسے معلوم ہونا ہے کہ اوکاڑوی صاحت کے ساتھ ہم ت ی‬

‫مر گئے ہنن اوڑ بہ بقرپرون کی ڑوبقنن ست اوکاڑوی صاحت علتہ الرحمہ کے ساتھ تھنن خو وہ ا پئے‬
‫ساتھ لے گئے ۔‬

‫خق و صداقت کی نات ‪ :‬حضرت علامہ حطیت ناکسیان انک ا پئے حطات منن فرماڑ ہے تھے اوڑ *‬
‫لصل ل ک سم تمہ حیل‬
‫گ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ی‬
‫م‬
‫ی‬
‫میرے اقا پیی علتہ ا وہ و ا سلام ے د یون ‪ ،‬نن خ رنا ون ‪ ،‬تم حت رو ے اوڑ را‬

‫ھ ک‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ت ی اپیقال ہوگا ‪ ،‬تمہاڑی قیر ت ی ھول کر جلسے والو دنکھ لنیا اوڑ میری قیر ت ی میی ہیاکر دنکھ‬
‫ہ‬
‫لنیا خود ی پیا جل جاے گا کہ کش کا مسلک خق پر ہے ‪ ،‬کون سجا ہے اوڑ کون حھونا ہے ؟ منن بہ‬

‫کہیا ہون کہ علامہ اوکاڑوی علتہ الرحمہ کا وصال ناکمال ہوا وہ میظر حیہون تے تماڑ حیاڑہ منن اوڑ‬

‫ات کا حیاڑہ اتھا تے والون تے دنکھا وہ منن کہان پیان کرسکیا ہون ست کو معلوم ہے مگر اپیا ضروڑ‬
‫کہون گا کہ وہ ساڑی ڑندگی ناج داڑ مدپتہ حصوڑ پیی کرتم ڑؤف و ڑحیم ﷺ کی سان پیان فرما تے‬
‫ڑ ہے ‪ُ ،‬دڑود و سلام ا پئے اقا پر پر ھئے ڑ ہے اس اقا علتہ السلام تے اپیا کرم فرمانا کہ حضرت علامہ‬

‫اوکاڑوی کے اخری سقر کی سان اوڑ ات کو لجد منن حت اناڑا گیا بو ال ّٰلہ بعالی کے دکر اوڑ ُدڑود و سلام‬
‫کی گو تخ منن ُسیرد جاک کیا گیا اوڑ اج نک ات کی پرپت میاڑک پر تھول تحھاوڑ کئے جا تے ہنن ‪،‬‬
‫م‬
‫فران خوانی اوڑ ُدڑود و سلام سے ڑاپرپن و جاضرپن ات کے جا ہئے وا لے ات سے حیت کر تے‬
‫مسنق‬
‫ی‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫وا لے ڑندگی منن ات کے حطات سے ص و تے وا ے ‪ ،‬ات کی ڑوج و ابصال بوات ر تے‬
‫ک‬
‫م‬
‫ہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی حضرت علامہ اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے مراڑ ُپر ابواڑ بہ لا ھون کروڑون ڑح ینن‬
‫ناڑل فرماے ‪ ،‬امنن‬
‫ا پئے وعدے اوڑ قول کے سحے ‪ :‬حطیت ناکسیان ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی دات منن انک جاص خونی *‬

‫ھ‬
‫ت ی تہت سے اوصاف کے مالک و جامل تھے ۔ لوگ ات کے حطات کے لئے ناڑ تخ لنئے ا تے تھے بو‬

‫م‬
‫کس‬
‫ھ‬
‫دو دو ہنئے نلکہ اس سے ڑنادہ عرصہ نک ناڑ تخ تہنن ملیی ت ی اوڑ حت ی کو ناڑ تخ دے د پئے‬

‫م‬
‫ھ‬
‫تھے بو اند ی ہو ‪ ،‬حھکرہو ‪ ،‬ناڑس ہو ‪ ،‬سردی ہو ‪ ،‬گر ی ہو ‪ُ ،‬دوڑ ہو نا پردنک ‪ ،‬دتہات ہو نا سہر‬
‫ہ‬
‫ات ا پئے وعدے کے مطابق اس ناڑ تخ پر وقت پر وہان ضروڑ حست وعدہ حطات فرما تے ت یحئے تھے‬
‫م ھ‬
‫۔ دڑمیان منن اگر کونی مل مالک ‪ ،‬کونی پیگلے والا ‪ ،‬مال داڑ اسا ی ت ی ات کے ناس اجانی کہ‬
‫ہ‬
‫ہ م‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫م‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫ل‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ج‬
‫ئ‬
‫ل‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ل‬
‫ی‬
‫بہ ناڑ تخ ن دے د ن ۔ ماڑی وڑی ے ‪ ،‬ماڑے ے ن جا ف وگ ڑ ے ن اوڑ‬
‫ک‬
‫وہان ات کا حطات تہت ضروڑی ہے ‪ ،‬مہرنانی فرماکر قلان کی ناڑ تخ ینسل کردپن اوڑ وہ ناڑ تخ‬
‫ہ‬
‫منن دے دپن بو ات پرحستہ فرما تے کہ منن بہ ناڑ تخ تہنن دے سکیا ۔ بہ ناڑ تخ وعظ کے لئے‬
‫ک‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫م‬
‫م‬
‫م‬
‫ق‬
‫ح‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫خ‬
‫ک‬
‫گ‬
‫قلان کو دے ڑ ی ے ا ر ات کی یوڑی ے ‪ ،‬جا نن ے وات نن حطات رانا ے بو نن‬
‫ک‬
‫جاضر ہون مگر قلان جگہ حہان منن تے ناڑ تخ وعظ کے لئے دے ڑ ھی ہے وہان میرا حطات ا پ ےئ‬
‫تحے حیم ہوگا وہان سواڑی کا اپیطام کر کے اجا پئے گا اوڑ تھر ات کے ہان حطات کر تے جاضر‬
‫کھ‬
‫کیھ‬
‫س‬
‫م‬
‫ب‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ع‬
‫ہوجاؤن گا ۔ ات تے ابسا ی بہ یا کہ انک رپت یی ن ناڑ خ دے ڑ ی ے اوڑ وہ ی‬
‫کس‬

‫م‬
‫امیر اد ی کو دے دپن خواہ ڑنادہ ندپرانی کا امکان ہو ۔ وعدے کی ناپیدی کا حضرت تے ہمنشہ‬
‫حیال ڑکھا ۔‬

‫م مح‬
‫م‬
‫ع‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ہ‬
‫عل‬
‫مل‬
‫ل‬
‫س‬
‫عالم دپن و ولی کا ل ‪ :‬ے ا پ ے دوست ے دڑ ب ے وم وا کہ مدپتہ الاو یاء یان ربف *‬
‫منن مدڑشہ ابواڑ العلوم کا سالابہ جلشہ تھا ۔ جلسے منن حہان وطن عرپر کے نام وَڑ علماء کرام و‬

‫ع‬
‫مسا تخ عطام سرنک تھے وہان حطیت ا ظم ناکسیان علامہ اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ اوڑ‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫حضرت علامہ قیی طقر ع ی بعمانی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ت ی سرنک جلشہ تھے ۔ علماء کرام کے‬
‫حطانات نکے بعد دنگرے ہوڑ ہے تھے کہ اجانک ناڑس سروع ہوگیی او ڑناڑس کی وجہ سے لوگ‬
‫لگ خ س‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫سی‬
‫ن‬
‫ق‬
‫ح‬
‫ک‬
‫ی‬
‫ت‬
‫ع‬
‫ض‬
‫ی‬
‫جلشہ گاہ سے اتھ کر جا تے ے و ا خ ر ری ے وہ وڑا رت رالی ڑمان ‪ ،‬ڑاڑی دوڑان ‪،‬‬
‫سع ظم‬
‫م‬
‫ل‬
‫ج‬
‫ّٰ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ض‬
‫م‬
‫عل‬
‫ل‬
‫حضرت علامہ سید احمد ید کا ی ساہ صاحت ڑحمہ ا لہ تہ کی جد ت ن جا ر وے‪ ،‬سے کی‬
‫ضوڑت جال سے اگاہ کیا کہ حصوڑ والا سان ناڑس کی وجہ سے لوگ اتھ کر جاڑ ہے ہنن اوڑ پیدال‬
‫ظ‬
‫ص‬
‫م‬
‫ّٰ‬
‫ح‬
‫جالی ہوڑہا ہے کیا کیا جا تے ؟ ڑوسن میر قیلہ علامہ کا ی ساہ ڑحمہ اللہ علتہ تے فرمانا کہ ضرت‬
‫س‬
‫م ق‬
‫مولانا الجاقظ حمد س یع اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کو قوڑا بقرپر کر تے ا نیخ پر پیھادنا جا تے ۔‬
‫سنی پ بس ف ہ تھ ننیھئ ہ‬
‫م‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ّٰ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ل‬
‫ت‬
‫علامہ اوکاڑوی حت ا خ ر ربف رما وے ے بو ے ی ے ا لہ بعالی کی ناڑگاہ ن دعا ے‬
‫ل‬
‫لئے ہاتھ اتھاے اوڑ بہ دعا فرمانی کہ مالک و مولی ‪ ،‬ناڑت العا منن اس جلسے منن لوگ نیرے‬
‫اوڑ نیرے پیاڑے جنیت ( ﷺ ) کے دکر کے لئے حمع ہوے ہنن ‪ ،‬اے ال ّٰلہ ناڑس پید فرمادے اوڑ‬

‫ھ‬
‫تھر بقرپر کے لئے حطتہ سروع کیا ات ی حطتہ حیم تہنن ہوا تھا کہ ال ّٰلہ بعالی کے قصل و کرم سے ناڑس‬
‫سم‬
‫پرسیا پید ہوگیی ۔ حضرت علامہ مقیی طقر علی بعمانی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے فرمانا کہ تہلے بو ہم بہ حھ ےئ‬
‫تھے کہ حضرت علامہ اوکاڑوی صاحت عالم دپن ہنن مگر اج معلوم ہوا کہ علامہ اوکاڑوی عالم‬
‫ھ‬
‫دپن ہو تے کے ساتھ ساتھ ولی کامل ت ی ہنن ۔‬

‫ک‬
‫علماے کرام کے پردنک قدڑ و میرلت ‪ :‬عالیا سن اننش سو س ّٰیر نا ا ہیر ( ‪00-0008‬ء ) کی *‬

‫ع‬
‫نات ہے کہ حت حماعت اہل س ّٰنت اوڑ حمعیت علماے ناکسیان کا انک طیم السان جلشہ ( ُس ّٰیی‬
‫لیک م‬
‫کابقربش ) بسیر ناڑک منن ہوا ۔ ا سن ہم کے دوڑان بہ جلشہ میعقد ہوا ۔ حطیت ناکسیان ڑحمہ‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ال ّٰلہ علتہ حماعت اہل س ّٰنت کے صدڑ ‪ ،‬ناظم اع ی حضرت علامہ مولانا سعادت ع ی قادڑی ڑحمہ ال ّٰلہ‬
‫تھے ۔ حت سیاسی حماعت خو حمعیت علماے ناکسیان کے صدڑ مولانا ساہ احمد بوڑانی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ‬
‫‪ ،‬جیرل سیکیرنیری مجاہد اہل س ّٰنت حضرت علامہ مولانا عیدالسیاڑ جان پیاڑی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ ‪ ،‬ناظم‬
‫م ل ظ ل‬
‫ح‬
‫س‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫ت‬
‫بسر و اساعت حیات جیرم ا مقام ہوڑ ا ن ت ونالی س ید ے ۔ اس کابقر ش ن بوڑے‬
‫س‬
‫س‬
‫ملک کے علماے کرام ا نیخ پر موخود تھے ۔ علماے کرام حطانات کے بعد اعلان کیا گیا حہان ا نیخ پر‬
‫علماے کرام کا حم عقیر موخود ہے ست تے ابقاق ڑاے بہ قیصلہ ظے نانا کہ خون کہ الیکسن مہم رپ‬

‫تہت اخراجات ہو تے ہنن ۔ حیدے کی تہت ضروڑت ہے اوڑ حطیت ناکسیان حضرت علامہ مولانا‬
‫م ق‬
‫حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ جلسے کے سرکاء سے حیدہ حمع کرپن گے بعیی حمع کر تے کے لئے حطیت‬
‫س ک‬
‫ناکسیان کے نام فرعہ پرا ۔ حطیت ناکسیان ا نیخ پر ھرے ہوکر فرما تے ہنن ۔ تمام علماے کرام‬
‫تے حیدہ حمع کر تے کے لئے اوکاڑوی کو منیحت کیا ہے اے کراحی کے ڑ ہئے وا لے س ّٰیی تھاپیون ! اوکاڑوی‬
‫ک‬
‫کی ڑنان کی لاج ڑ ھیا اوڑ ست علما تے قیصلہ کیا ہے کہ حیدہ گیاڑہوپن وا لے نیران نیر کی بسنت سے‬
‫گیاڑہ ہراڑ ڑو تے ( ‪ -/007888‬ڑو تے ) ہونا جا ہئے حت نک گیاڑہ ہراڑ ڑو تے حیدہ بوڑا تہنن‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫ہوگا اوکاڑوی نیھے گا تہنن ۔ ات کی ڑنان منن وہ نانیر ت ی لوگون تے حیدہ دپیا سروع کیا ۔ حت‬

‫ناڑہ ہراڑ ڑو تے حیدہ ہوگیا بو اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے فرمانا وعدہ گیاڑہ ہراڑ کا ہے ‪ ،‬ناڑہ‬

‫ھ ھ‬
‫ہراڑ ہوگیا ہے بش اوڑ حیدہ تہنن جا ہئے تہت تہت سکربہ ۔ حت لوگ ات ی ت ی اوڑ حیدہ د پئے‬
‫ھ ہ‬
‫کے لئے پیاڑ تھے ۔ علماے کرام تے ت ی ت ی قیصلہ کیا کہ دس میت منن اپیا حمع کرنا ضرف‬

‫ھ‬
‫اوکاڑوی صاحت کا جاصہ ہے اوڑ کونی تہنن کرسکیا ۔ اس طرج اوکاڑوی پر لوگ ننسے ت ی تحھاوڑ‬
‫کر تے تھے ۔‬
‫ع‬
‫ع ھ‬
‫حطیت ناکسیان عالم نا مل ‪ :‬حطیت ناکسیان خو کہئے تھے اس پر خود مل ت ی کر تے تھے ۔ *‬
‫گ‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫اکیر ات کے جلسے منن حطات ڑات دو دھانی تحے حیم ہونا تھا اوڑ دو دھانی ے سے م حطات‬
‫ع س‬
‫ھ‬
‫ت ی تہنن ہونا تھا۔ اکیر بعت خوابون کو فرمانا کر تے تھے کہ منن تے تمہاڑی ب ینن ا نیخ پر ننیھ‬
‫گ‬
‫کر دو ھنئے نک ُسیی ہنن حت میری بقرپر سروع ہونی ہے بو ات ست انک انک کر کے جل د پئے‬

‫ھ‬
‫ہنن ‪ ،‬بہ تھیک تہنن ہے ۔ ات ت ی حطات منن ننیھا کرپن ۔ بقرپر ُسیا کرپن ۔ مدعا میرا ہے ڑات‬

‫کو اپیا وقت پیت جانا تھر وابش ا پئے دولت جا تے بسربف جانا ۔ ننید کا کش قدڑ علتہ ہونا ہوگا منن‬
‫تے ُسیا ہے علامہ اوکاڑوی علتہ الرحمہ ڑات کو سو تے تہنن نلکہ فران و جدپت کا مطالعہ فرما تے‬
‫ق‬
‫ق‬
‫تحقیق و بصنیف منن مسعول ڑ ہئے اوڑ تماڑ جر پر ھئے اوڑ تماڑ جر کے بعد اوڑاد و طابف منن مسعول‬
‫ھ‬
‫ڑ ہئے اوڑ تماڑ اسراق پرھ کر تھر اڑام فرما تے ۔ جلسے منن ت ی اعلان فرما تے تھے کہ میرے‬

‫ق‬
‫س ّٰیی تھاپیون ! تماڑ فرص ہے قصا تہنن ہونی جا ہئے اگر تماڑ جر قصا ہوگیی بو ات تے اپیا بقصان کردنا‬
‫۔‬
‫م‬
‫ل‬
‫ہماڑے نیر و مرسد سے والہابہ حیت اوڑ جلیفہ ع ی حسن صاحت کی عرت ‪ :‬حت سے جلیفہ ضوقی *‬
‫ل‬
‫ع ی حسن صاحت مدطلہ العالی کالا نل منن بسربف لاے اوڑ مسجد بطیربہ اوڑ مدڑشہ بعلیم القران‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫مس‬
‫م‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ئ‬
‫ل‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ننیاد ڑ ی ۔ حت سے ات تے علامہ اوکاڑوی صاحت و ا یی جد ن حطات ے ے وانا سروع‬
‫کیا ۔ حت حمعہ کی حھیی کا گوڑتمیت تے اعلان فرمانا بو جلیفہ صاحت تے عرس میاڑک ا پئے نیر و مرسد‬
‫ع لمعظ ہی ع‬
‫ل‬
‫ظ‬
‫ل‬
‫م‬
‫ّٰ‬
‫ط‬
‫ن‬
‫سل‬
‫ع‬
‫عل‬
‫ی‬
‫ی‬
‫س‬
‫ب‬
‫س‬
‫ل‬
‫س‬
‫وت ا م ‪ ،‬ڑ ر ا م لہ ب نت ڑ ولی ا جاج ر ب ر احمد صاحت ڑحمہ ا لہ تہ ا روف‬
‫م‬
‫سرکاڑ موہروی اوڑ عوت الامت ‪ ،‬حضرت الجاج نیر خواجہ حمد قاسم صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ صاحت‬
‫کگ‬
‫ل‬
‫س‬
‫ھ‬
‫کا عرس میا تے کا سلسلہ سروع کیا ۔ جلیفہ صاحت حضرت علامہ اوکاڑوی ے ر ب ربف ے جا تے‬
‫ھ‬
‫منن ت ی ساتھ ہونا تھا ۔ جلیفہ صاحت عرص کر تے میرے نیرو مرسد کا عرس میاڑک ہے ات تے‬
‫حطات فرمانا ہے ۔ علامہ اوکاڑوی صاحت فرما تے ات کو معلوم ہے کہ منن ڑات کو بقرپر کرنا‬

‫ہون اوڑ دن کو اڑام کرنا ہون کنسے اؤن گا ؟ جلیفہ صاحت مسکراکر تھر عرص گراڑ ہوے حصوڑ‬

‫منن تہنن جاپیا میرے نیرو مرسد عرس میاڑک ات بسربف لاننن گے ۔ ات تہنن اننن گے بو اوڑ‬
‫کون اے گا ؟ بو تھر اوکاڑوی صاحت علتہ الرحمہ مسکراکر فرما تے احھا جلیفہ صاحت ! عرس‬
‫تھ‬
‫یکس‬
‫میاڑک ہے بو منن ان ساء ال ّٰلہ ضروڑ جاضر ہون گا ۔ جلیفہ صاحت کہئے کہ حصوڑ پ ی وعیرہ یخ‬

‫ک‬
‫ہ‬
‫دون ؟ ات فرما تے تہنن منن خود ی اجاؤن گا ۔ جلیفہ صاحت ‪ ،‬ات بکلیف بہ یحئے گا ۔ تھر‬
‫وقت مقرڑہ پر علامہ اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ بسربف لے ا تے اوڑ بوڑانی ‪ ،‬ڑوجانی ‪ ،‬وجدانی‬
‫عل‬
‫اوڑ می حطات ہونا ۔ لوگون کی انکھون منن ابسو حھلک جا تے انک عحیت کیف سامعنن رپ‬
‫حھاجانا خو پیان سے ناہر ہے ۔ جلیفہ صاحت ہمنشہ ہر حمعہ کو علامہ اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا‬
‫ُ‬
‫حطات ُسنئے کے لئے مسجد گل ڑاڑ جنیت بسربف لے جا تے ۔‬
‫اسی طرج اسی بسنت سے ان کے شہ ڑادے صاحت ڑادے حضرت علامہ مولانا داکیر کوکت‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫بوڑانی اوکاڑوی صاحت اس ڑواپت کو ناقی ڑ ھے ہوے ہنن حت ت ی داکیر صاحت کی جدمت‬

‫ھ‬
‫ھ‬
‫منن عرص ات ت ی اسی طرج بسربف لا تے ہنن ۔ ات کا حطات ُسنئے کے لئے ت ی لوگ ُدوڑ ُدوڑ‬
‫سے حمع ہو تے ہنن ۔ ال ّٰلہ بعالی علامہ داکیر کوکت بوڑانی اوکاڑوی مدطلہ العالی کو صحت و پن‬
‫ل‬
‫ک‬
‫م‬
‫دڑسیی کے ساتھ میی ڑندگی عطا فرماکر سلامت ناکرامت ڑ ھے اوڑ ا پئے والد صاحت کے سن کو خو‬
‫وہ لے کر جل ڑ ہے ہنن دن دوگیی ڑات خوگیی پرقی عطا فرماے ۔ ان ال ّٰلہ والون کے صد قے منن‬
‫ھ‬
‫ہماڑی ت ی معقرت فرماے ‪ ،‬جاتمہ نالاتمان فرماے ۔ گنید حضرا کے ساے منن موت سرکاڑ‬
‫ل‬
‫لق‬
‫مدپتہ ﷺ کے قدمون منن ہو اوڑ مدقن حیت ا ی یع بصیت ہو ‪ ،‬امنن نا ڑت العا منن‬
‫عاخر پیدہ‬
‫م‬
‫حمد سربف عقرلہ بقش پیدی‬

‫مدنی مسجد ڑنلوے کالونی پرد ڑندہ نیر دڑناڑ ‪ ،‬کراحی کنیت‬

‫اخر احیلاف کیون‬
‫لم‬
‫م‬
‫حطیت ملت علامہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی کے بعاون سے مولانا اوکاڑوی اکاد ی (العا ی ) تے انک‬

‫ودبو کنست اوڑ سی دی پیاڑ کی ہے حسے امربکا ‪ ،‬حیونی افربکا ‪ ،‬پرطاپیا اوڑ دنگر میعدد ممالک منن تے پیاہ‬
‫بسید کیا گیا ہے اوڑ اس سے ہراڑون افراد کے عقاند کی اصلاج ہونی ہے ۔ اس کنست اوڑ سی دی کی‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ا میت اوڑ خونی کا انداڑہ ات ا سے دنکھ کر ی کرسکنن گے ‪ ،‬اس منن ُس ّٰیی پرنلوی اوڑ دبوپیدی‬
‫کس‬
‫وہانی احیلاف کے وہ حقابق ننش کئے گئے ہنن خو ات تے ی جد نک ساند ضرف پر ھے ُسئے ہون‬
‫نک‬
‫گے۔ اس احیلاف کے حقابق کو ناقانل پردند دسیاوپری پیوت کے ساتھ د ھئے کے لئے بہ کنست اوڑ‬

‫سی دی ضروڑ جاصل کرپن اوڑ مسلک خق پر ناپت و قاتم ڑ ہئے کے لئے اس کنست اوڑ سی دی کو‬

‫ُ‬
‫تھیلاننن ‪ ،‬بہ کنست اوڑ سی دی مکنتہ گل ڑاڑ جنیت منن دست نات ہے ۔ علاوہ اڑپن علامہ‬
‫ھ‬
‫اوکاڑوی کے اس مسہوڑ نی وی پروگرام کی کنست ت ی دست نات ہے حش منن ا تہون تے مراڑات‬

‫ل‬
‫اولیاء کے ناڑے منن دبوپیدی علماء کی کیت سے خوا لے ننش کر تے ہو تے حیات اجیرام ا حق‬
‫تھابوی کی ہرڑہ سرانی کا خوات دنا ہے ۔‬
‫) من جاپت ‪ :‬مکنتہ گل ڑاڑ جنیت ( جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت‬
‫ل‬
‫گلسیان اوکاڑوی ( سو جر ناڑاڑ ) کراحی‬
‫حطیت ناکسیان کے عرس سربف منن جاضری‬
‫ل‬
‫س‬
‫مسلمن حط عظ کس سل ل عطن حض ع م مح س یق‬
‫یخ الاسلام وا ن یت ا م نا یان طان ا وا ن رت لامہ ولانا مد ع‬

‫ع‬
‫ل‬
‫اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے سالابہ عرس میاڑک منن تہ ی ناڑ سرکت کا موقع ملا نلکہ حطیت ا ظم‬
‫ہ‬
‫ناکسیان ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ تے خود ی ڑوجانی انداڑ منن نلوالیا تھا وڑبہ اکیر علما حمعہ کی تماڑپن اپیی‬
‫م‬
‫ع‬
‫اپیی مساجد منن ادا کر تے کے بعد جاضر ہو تے ہنن ۔ حضرت حطیت ا ظم ناکسیان تے مولانا حمد‬

‫ل‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ع ی خوہر اوڑ مولانا سوکت ع ی اوڑ سید نیر حماعت ع ی ساہ اوڑ دنگر معروف لوگون سے الگ انداڑ‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ت‬
‫حطاپت اوڑ نالکل جدند اسلوت حطاپت کی ننیاد ڑ ی اوڑ ھر ‪ 03‬قیصد ما تے کام نانی اوڑ سہرت‬
‫ع‬
‫جاصل کر تے کے لئے اوڑ عوام منن مقیولیت ن ّٰامہ جاصل کر تے کے لئے حضرت حطیت ا ظم‬
‫ل‬
‫ناکسیان کا اتجاد کردہ اسلوت حطاپت اجنیاڑ کیا ۔ میرے حسر حضرت سید اکرم ع ی ساہ صاحت تے‬

‫فرمانا خو پربش ڑود بہ قیام ندپر تھے ‪ ،‬کہ مولانا سییر اظہری کہا کر تے تھے کہ ات بو کراحی منن‬
‫ہ‬
‫حش تے کھانا کمانا ہے ا سے اوکاڑوی صاحت کا انداڑ حطاپت ی اجنیاڑ کرنا ہوگا ۔‬

‫ک‬
‫م‬
‫وہ کہا کر تے تھے کہ مولانا حمد ناڑ گوہر او ڑمنن مل کر ا ھ ّٰئے کراحی اے تھے اوڑ وہ حضرت کا انداڑ‬
‫اجنیاڑ بہ کرسکے مگر منن قیا قی الاوکاڑوی ہوگیا ہون اس لئے میری مانگ پرھ گیی ہے ۔ اگرجہ‬
‫تھ‬
‫لقی ع س حس تھ‬
‫ہ‬
‫ک‬
‫م‬
‫ح‬
‫پ‬
‫گ‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ض‬
‫ق‬
‫مولانا ابو خ لام ڑ ول یی ی رت ے رسیاڑ ن ر وہ دوڑان ب ر ر انک اپیا ڑنگ ی‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ڑ ھئے ہنن مگر منن بو اوکاڑوی کا نانی ہون۔ ال ّٰلہ کا سکر ہے ات بو دوڑان بقرپر میری انکھ ت ی‬
‫لگ‬
‫) حضرت کی طرج تھر کئے ی ہے ۔( تحوالہ ساہ صاحت‬

‫ہ‬
‫لہدا بہ ات ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا جدند انداڑ حطاپت بوڑے ناکسیان منن تھیل گیا اوڑ ت ی وہ انداڑ تھا‬

‫خو علما کی سہرت کا سنت پن گیا ۔ میرا اتمان ہے کہ وہ واعطنن خو لوگون کی بوجہ کا مرکر تہنن پن‬
‫س‬
‫نا تے وہ حضرت کے ڑوصہ اقدس پر جاضری دپن بو ان ساء ال ّٰلہ ب جیر قلوت کی سعادت اتہنن‬
‫ہ‬
‫منسر ہوگی ۔ منن حقیر و ققیر سرانا بقصیر خو ا پئے ات من موہن پیا ہوا ہون بہ ست ات کا ی‬
‫ق‬
‫رن ضعیرہ ان الحیال من الحصاء‬
‫یص ہے ۔ لا تحق ّٰ‬
‫اتمہ مساجد کو پیعام‬
‫ہراڑون سال پرگش اپیی تے بوڑی بہ ڑونی ہے پری مسکل سے ہونا ہے حمن منن دندہ وڑ پیدا‬

‫ہ‬
‫بوڑے ناکسیان سے بہ س ی ضرف کراحی اوڑ سیدھ کے پرے سہرون کے علما حطیا حضرت کے عرس‬

‫سربف منن سرکت کے لئے اگرجہ انک حمعہ ا پئے ہان بہ پرھاننن اوڑ صاحیان طربقت و ڑاڑداڑان‬
‫ڑموڑ سربعت سہنساہ حطاپت سیرات سنتہ من قیصان مدپتہ حضرت قیلہ کے عرس سربف منن‬
‫ق‬
‫سرنک ہوجانا کرپن بو بہ ان کے لئے سال تھر کے لئے ڑوجانی ہم و فراست ڑوجانی ناناپیون اوڑ‬
‫عل‬
‫سالابہ می صلاجنیون منن لامجدود اصاقون کا انک موقع فراہم ہوگا حش سے وہ خود ان ساء اللہّٰ‬
‫نل م‬
‫ح‬
‫گ‬
‫س‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ا پئے اندڑ پید ی وس ر ن ے ۔‬
‫منن کامل بقنن کے ساتھ اوڑ بوڑے وبوق سے کہہ سکیا ہون کہ وال ّٰلہ نال ّٰلہ خو حطیت و واعظ ا پئے‬
‫ک‬
‫پیان منن سامعنن کے من موہ لنئے کی نانیر بہ ڑ ھئے ہون وہ حضرت کے مراڑ ُپر ابواڑ پر جاضری‬
‫دپن قاتحہ پرھنن اوڑ ہر حمعرات ناپیدی سے حضرت کے وسیلہ جلیلہ سے دعا کرپن ‪ ،‬جنیی مرپتہ‬

‫ہ‬
‫جاضری منن کیرت ہوگی اپیی ی پرکت و سعادت اوڑ کام نانی قدم خو مے گی اوڑ حضرت قیلہ‬

‫ع‬
‫علتہ الرحمہ ا سے سید الاننیاء ﷺ کے وکیل ا ظم ہو تے کے نا ظے ناڑگاہ ڑسالت پیاہ ﷺ سے‬
‫بس‬
‫ق م‬
‫ن‬
‫ل‬
‫ق‬
‫ی‬
‫ن‬
‫گ‬
‫ج‬
‫ل‬
‫ق‬
‫ط‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ح‬
‫س‬
‫ی‬
‫ع‬
‫سقاڑس کر کے ا سے ر ا وت کی طا ت ل روا ن ے ناکہ وہ یت نا وا ظ رکاڑ مدپتہ‬
‫ﷺ کے قیوص و پرکات تھیلا تے والا اوڑ عسق ڑسول ﷺ کی خوس بو داڑ ہواننن تھیلا تے والا‬
‫پن سکے ۔‬

‫ہ گ‬
‫گ‬
‫پیجانی کا مقولہ ہے کہ ناس ھوڑی اوڑ ناس ی ھوڑی کا میدان ۔ منن اپیا اڑمودہ بسحہ پیاڑہا ہون‬
‫اڑمانا ات کا کام ہے ‪ ،‬میرا بو بہ اتمان ہے ‪ ،‬اگرجہ احھے واعظ ڑنادہ ہو گئے بو میرا دبوالتہ ہو تے کا‬
‫حظرہ ہے مگر منن بہ حظرہ مول لنئے کو پیاڑ ہون ۔‬

‫ھ‬
‫حضرت قیلہ کے دڑناڑ کی جاضری کے قواند خو منن تے عرص کئے اس کے علاوہ اوڑ ت ی تہت ساڑی‬
‫قیوص و پرکات ہنن خو قی الجال گیجابش بہ ہو تے کے سنت تہنن لکھ ناڑہا ‪ ،‬پراہ ڑاست قون پر‬
‫جاہنن بو ڑابطہ کرسکئے ہنن ۔‬

‫ل‬
‫ہان بو تہ ی گقیگو جاڑی ہے ‪ ،‬بقنن اجاے بو تھیک ‪ ،‬اس س ّٰیر سالہ بوڑڑ ھے عالم دپن کی نات پر‬
‫ع‬
‫م‬
‫مل کرپن وڑبہ اڑما تے منن کیا خرج ہے مگر جاضری کا طربفہ اوڑ دعا تجرپر سدہ حھ عاخر سے‬
‫ھ‬
‫وضول کرلنن ‪ ،‬جاضری کے موقع پر ات پرھنن گے اوڑ کونی ت ی عاڑصہ لاخق ہو تہاپت عاخری سے‬
‫دڑخواست کرپن اج کل ح ّٰم عقیر مراڑ سربف کی طرف پرھ ڑہا ہے ۔ اوڑ عسق ڑسول ﷺ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫گ‬
‫ہ‬
‫ی‬
‫ل‬
‫ّٰ‬
‫ت‬
‫ح‬
‫ت‬
‫گ‬
‫ن‬
‫ف‬
‫ض‬
‫م‬
‫تھیلا تے والا ی ن رنا رت صاحت کی بو ساڑی ڑندگی ی رما تے رڑ یی کہ اللہ وا ے‬
‫تہنن مر تے ‪ ،‬نلکہ اتہنن پیا حسم عطا کردنا جانا ہے ‪ ،‬وہ ہمنشہ ڑندہ ڑ ہئے ہنن ‪ ،‬نلکہ ڑت ان سے پیاڑ‬
‫ہ‬
‫کرنا ہے ۔ جدپت قدسی بو ات تے حضرت سے اوڑ دنگر علما حضرات سے ُسیی ی ہوگی کہ من عاد لی‬
‫س‬
‫ل‬
‫ک‬
‫ولیا ققد ادپتہ قی ا جرت ( بعیی خو حص میرے ولیون سے عداوت ڑ ھیا ہو وہ جدا سے میاڑڑت‬
‫س‬
‫طلت کرڑہا ہے ‪ ،‬ابسا حص اے اوڑ جدا سے لرے ) ۔‬

‫خوپییر حطیت ناکسیان‬
‫ع‬
‫حطیت ا ظم ناکسیان کے ست سے پرے فرڑند اڑحمید حضرت علامہ داکیر کوکت بوڑانی اوکاڑوی‬
‫‪ :‬دامت پرکاتہم العالتہ کو ننن عسرون منن َمنن تے حید ناڑ دنکھا‬

‫ل‬
‫تہ ی مرپتہ ‪:‬۔ وہ کلمہ خوک کے ناس جامعہ عوپتہ سے فران ناک پرھ کر اڑ ہے تھے ‪ ،‬حید طلتہ اوڑ‬
‫گ‬
‫تھی ساتھ تھے ‪ ،‬اوڑ منن حطیت ناکسیان سے مل کر ا پئے ھر جاڑہا تھا ‪ ،‬اس وقت ات کی ع رم‬

‫ہ‬
‫ھ‬
‫عالیا حھ پرس کے فرپت ت ی مگر ساتھیون منن و ی قاندابہ صلاحیت کے ساتھ ہر انک کو داپت‬
‫ھ‬
‫دپت کے لے جاڑ ہے تھے ‪ ،‬حہرے پر حسن و حمال کی انک تہہ عیان ت ی ۔‬

‫س‬
‫دوسری مرپتہ ‪:‬۔ ‪ 02‬ڑپیع الاول کو عید میلاد کے جلسے منن ا نیخ پر انک اسماڑت او ڑخوت‬

‫ضوڑت لرکا قاند اہل س ّٰنت کے ساتھ ناقاعدہ گت ست منن مضروف تھا حت کہ احھے احھے لوگ تے‬
‫ھ‬
‫جاڑے ا پئے قاند سے ہاتھ ملا تے کی حساڑت ت ی تہنن کرسکئے تھے ‪ ،‬بہ جلوس حماعت اہل س ّٰنت‬
‫م‬
‫ع‬
‫کے ڑپر اہیمام میعقد ہونا تھا ‪ ،‬حضرت حطیت ا ظم ناکسیان خو اس حماعت اوڑ جلوس کے یظم‬
‫ک سن ک‬
‫ک ک ع نک‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ی‬
‫کر تے وا لے تھے ‪ ،‬ہر ‪ 08‬میت ے بعد ا یخ پر رے و تے ‪ ،‬وام کی رت وب وڑ د ے اوڑ‬
‫م‬
‫اپیی حیت پر ڑت کا سکر ادا کر تے ۔‬
‫سنی پ ئ عل قص من تہن نک‬
‫م تھ‬
‫م‬
‫ھ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ان‬
‫ی‬
‫اس کے بعد اس ا خ ر ا پ ے ما و لاء ن تے ن د ے ‪ ،‬دان ن ک اد ی کی ی‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫مرند گیجابش تہنن ت ی ‪ ،‬ناڑک کی دبواڑون پر دڑحیون اوڑ جاڑون ی جاپت بسیر ناڑک منن‬

‫ع‬
‫ہ‬
‫ابسان ی ابسان تھے ‪ ،‬حضرت حطیت ا ظم ناکسیان تہت خوس تھے کیون کہ ان کے ہاتھ کا لگانا‬
‫م‬
‫ہوا بودا ات پرا دڑحت پن حکا تھا ‪ ،‬جاڑون طرف نلدنگون اوڑ گیلربون سے حصوص اہل جابہ‬
‫ھ‬
‫اس ڑنگ و ڑوت کو اوڑ ت ی پرھاڑ ہے تھے ۔ خو لرکا قاند اہل س ّٰنت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ سے گت ست‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫کرڑہا تھا ‪ ،‬تہ ی نلاوت کے بعد بعت سربف اس تے پر ی بو پیا جلا کہ بہ کوکت بوڑانی اوکاڑوی ہنن‬
‫ع‬
‫ل‬
‫‪ ،‬تہ ی بقرپر حطیت ا ظم ناکسیان تے کی ‪ ،‬وال ّٰلہ منن دڑناے جیرت منن دوت گیا کہ واقعانی بقاڑپر‬
‫م‬
‫ہ‬
‫بوسنئے ی ڑ ہئے تھے ‪ ،‬اس دن ات تے بوڑ اوڑ حقیقت حمدی ﷺ پر بقرپر فرمانی۔ ’’ وجدت‬
‫م‬
‫ظ‬
‫ل‬
‫ج‬
‫م‬
‫ل‬
‫ن‬
‫الوخود و وجدہ السہود ‘‘ پر تہاپت مقصل بقرپر فرمانی کہ ش وت لی‪ ،‬ن اس حماعت کا نا م‬
‫م‬
‫ح‬
‫بس ق پ تھ سنئ ک مل‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ن‬
‫م‬
‫بسر و اساعت ت ی ڑہا ‪ ،‬مگر بہ ابسا ع دوناڑہ د ھیا بصیت ہوا ‪ ،‬اوڑ بہ ا ی ب ر ر ر ے و ی‬
‫۔ میرے حیال منن وہ ان کی حیات طاہری منن اخر ی میلاد النیی ﷺ کا حسنن میظر تھا ‪ ،‬خو‬
‫ق‬
‫بسیر ناڑک کے حسن و حمال منن اصاقہ کرڑہا تھا ‪ ،‬منن سم کھاکر کہیا ہون کہ تھر ابسا میظر تہنن‬
‫ہ‬
‫دنکھا گیا ‪ ،‬ہر گر تہنن دنکھا گیا ۔ ات و ی بسیر ناڑک پیطیمون اوڑ حماعیون کے اصا قے کے ناوخود‬
‫ادھا جالی ہونا ہے ‪ ،‬معدڑت کے ساتھ عرص ہے کہ صاحت حمال سعادت حینن لرکا حن سے قاند اہل‬
‫م‬
‫ہ‬
‫س ّٰنت پری حیت فرماڑ ہے تھے ‪ ،‬اوڑ وہ لرکا حضرت صاحت کے بہ ہاتھ خوم ڑہا تھا ‪ ،‬اوڑ بہ ی‬
‫ناؤن منن گر ڑہا تھا ‪ ،‬نلکہ تہاپت نلید اجلاقی اوڑ ابسانی وقاڑ کے ساتھ نات حیت منن مضروف تھا‬
‫خ ہ س‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ی‬
‫ج‬
‫‪ ،‬اخر منن معلوم ہوا کہ بوت کے ناؤن نا لئے منن بظر اجا تے ہنن ۔ ا ر کاڑ ا ل ا خ و پیا لا کہ‬

‫ع‬
‫مس‬
‫ع‬
‫حطیت ا ظم ناکسیان کا فرڑند کوکت بوڑانی ہے خو نقیل منن انک طیم السان ابسان ننئے والا‬
‫تھا ۔‬
‫ننسری مرپتہ ‪:‬۔ بسنیی پیگلے منن بہ تحہ تماڑ کی کیات ‪ ،‬انگوتھے خو مئے کا مسیلہ اوڑ صلوہ و سلام‬
‫م‬
‫م‬
‫جس‬
‫ن ی کیت خو علامہ اوکاڑوی کی سیابہ ڑوڑ حیت کا تحوڑ اوڑ حققابہ ڑسا لے تھے ‪ ،‬داکیر صاحت‬

‫ھ‬
‫لرکنن منن ان کیت پر پیضرہ فرماڑ ہے تھے کہ ان کیابون کی اہل س ّٰنت کو کش قدڑ ضروڑت ت ی‬
‫گ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ض‬
‫ھ‬
‫‪ ،‬اوڑ بہ کیاننن ہر ر کی روڑت ن۔۔۔‬
‫ھ‬
‫ل‬
‫کا سی ی منییری ابگلش کا پرجا دے ڑ ہے ‪ FA‬خوت ی مرپتہ ‪:‬۔ عابشہ ناوانی اسکول منن عالیا ات‬
‫ہ‬
‫کرڑہا تھا ۔ پرجا حیم ہو تے سے تہلے ی ات بسربف لے گئے ‪ Invigilation‬تھے ‪ ،‬اوڑ منن‬
‫م‬
‫ح‬
‫گل‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫سی‬
‫ھ‬
‫ی‬
‫ب‬
‫منن تے تہجان لیا ‪ ،‬مگر ساند داکیر صاحت تے ے ہر گر ت نن ت جانا ۔ نن ان دبون ن یر ا ش‬
‫ل‬
‫نی خر تھا ‪ ،‬منن بطامت بعلیمات سیدھ سے وابستہ تھا اوڑ ا حمد ل ّٰلہ ‪ 00‬گرند نک پرقی کی اوڑ‬
‫دسیرکت اقنسر ہوکر گرستہ سال ڑپیاپر ہوگیا ۔‬

‫م‬
‫ناتحوپن مرپتہ ‪:‬۔ وہ قیامت جیر دن حش تے اہلیان ناکسیان اوڑ حصوصا کراحی کے حیت کر تے‬
‫ع‬
‫م ق‬
‫والون کے دلون کے خراع تحھاد پئے تھے ۔ بعیی حطیت ا ظم ناکسیان علامہ حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ‬
‫ص‬
‫گ‬
‫ح‬
‫م‬
‫ن‬
‫گ‬
‫ھ‬
‫ال ّٰلہ علتہ کا وصال اوڑ قیامت ضعری ۔ حت ات کا حسد جاکی ر لانا یا اوڑ ات کا حیاڑہ ن ن‬

‫ن‬
‫ھ‬
‫ڑکھا ہوا تھا ‪ ،‬داکیر کوکت بوڑانی اوکاڑوی تے پیاہ عم گساڑون کے ساتھ نیھے ہوے تھے ‪ ،‬منن ت ی‬

‫م‬
‫علیک سلیک کے بعد انک طرف ننیھ گیا ‪ ،‬ا پئے منن انک عاسق صادق ( مولانا حمد صدبق ) خوکہ‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ڑکسا جلانا تھا اوڑ حطاپت ت ی کرنا تھا ‪ ،‬وہ ڑوڑابہ ی حضرت حطیت ا ظم کی جدمت منن جاضر‬

‫ہونا اوڑ ات سے اپیی پیی بقرپر کر تے کے لئے معلومات ‪ ،‬طربفہ سلیفہ ‪ ،‬اسعاڑ اوڑ حکانات وعیرہ کے‬
‫لک‬
‫وعیر جاصل کرنا ‪ ،‬ات پیا تے ڑ ہئے اوڑ وہ اپیی کانی پر ھیا ڑہیا ‪ ،‬جاص طوڑ پر حضرت کی ‪Hinds‬‬
‫مکم تھ‬
‫لکھ‬
‫م‬
‫ن‬
‫عل‬
‫ی‬
‫پ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫م‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ی ونی تماڑ کی یات بو ا سے ل ناد ی ‪ ،‬اوڑ وہ اس یات ے تماڑ سے ق د یی سا ل‬
‫نک‬
‫پر بقرپر کرنا تھا ‪ ،‬حضرت قیلہ کوکت اوکاڑوی تے حت ا سے دنکھا بو ا ھون منن ابسو تھر اے اوڑ‬
‫سیک‬
‫ع‬
‫فرمانا تھانی میان حطیت ا ظم ناکسیان بو جلے گئے ‪ ،‬ات کش سے بقرپر ھو گے ؟ وہ عاسق‬
‫ح‬
‫ک‬
‫م‬
‫گ‬
‫صادق اد ی تھا اس کی یجنن بکل ینن اوڑ وہ کوکت بوڑانی صاحت کے قدمون پر گر پرا حھ دپر کے‬
‫تم‬
‫ھ‬
‫سک‬
‫ہ‬
‫ج‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ق‬
‫لئے ماخول اوڑ ت ی عم ڑدہ ہوگیا ‪ ،‬ات کا بہ فرمانا کہ ’’ ن ب ر ر ن ھا تے والا بو ل بسا‬
‫م‬
‫ح‬
‫ھ‬
‫‘‘ ‪ ،‬بہ حملہ من و عن ہے خو ے ناد ڑہ گیا ۔‬
‫حھیی مرپتہ ‪:‬۔ ہماڑی والدہ کے وصال پر منن انک وقد کے ساتھ بعرپت اوڑ قاتحہ خوانی کے لئے‬

‫کوکت بوڑانی صاحت کے ناس جاضر ہوا بو ات ا پئے والدپن مجدومنن کے مراڑپن اقدسنن کے‬
‫ک‬
‫جنیل سے ‪ ARY‬فرپت منیوپر کے دڑ بعے ا پئے پروگرام کی پیاڑی فرماڑ ہے تھے ان دبون ات‬
‫وابستہ تھے اوڑ دپن کا کام کرڑ ہے تھے مگر ات تے ہماڑے لئے تہت مضروف ہو تے کے ناوخود‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫وقت بکالا قاتحہ پر ی ‪ ،‬مراڑات کی ڑناڑت کرانی اوڑ منن الوداع کیا ۔‬

‫ع‬
‫سابوپن مرپتہ ‪:‬۔ حطیت ا ظم ناکسیان علامہ سیدی و مرسدی کا عالیا ‪ 22‬ناننسوان عرس سربف‬

‫تھا اوڑ قدڑت تے میری تمام مضروقیات کے دڑواڑے پید کرد پئے تھے حش کی پیاء پر منن ا پئے لمئے‬
‫عر صے نک عرس میاڑک منن سرنک بہ ہوسکا تھا ۔ نیر حضرت قیلہ صاحت کے عرس کی کرامت‬

‫ق‬
‫کہئے کہ منن ناقاعدہ حصول یص کی جاطر تمام معاملات پرک کر کے پروگرام سے ننش میت تہلے‬
‫ہ تہ‬
‫ہ ق ک ل مگ س م گی تھ‬
‫محھ کھل حھ تھ‬
‫ی‬
‫گ‬
‫ی خ یا تھا ‪ ،‬ات ے ی یی ی کہ حہان جا ون یصہ ر ون ‪ ،‬ر رم دا ن ر ی‬
‫س‬
‫ن‬
‫‪ ،‬کہ ا نیخ کے سا مئے نیھئے کی تجاے نا تخ حھ افراد کی جگہ حھوڑ کر ننیھ گیا ‪ ،‬قیل اڑپن قاتحہ خوانی و‬
‫س‬
‫مراڑ ُپر ابواڑ کی جاضری سے قاڑع ہوگیا تھا ‪ 0 ،‬سے ‪ 08‬وڑکرڑ کے سوا کونی حص بہ تھا ‪ ،‬منن جنسا‬
‫س ک‬
‫کہ عرص کیا کہ ا نیخ سے حھ قاصلے پر ننیھ گیا ‪ ،‬مسجد کا وسنع و عربص ہال اوڑ وسنع پیدال تھر تے‬
‫لگ گیا ۔‬
‫ہ‬
‫کاڑکیان وسنع تجربہ کے جامل تھے وہ جنسے جنسے افراد کی امد منن اصاقہ ہونا گیا و بسے و بسے ی وہ‬
‫ق‬
‫دڑنان تحھا تے اوڑ ا پئے دمہ ب سیم سدہ ا پئے ا پئے کامون منن مضروف دکھانی د پئے ‪ ،‬حت مسجد‬
‫ل ح نک‬
‫ئ سن صح سم تھ گ تھ ہ‬
‫س‬
‫ج‬
‫ک‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫ئ‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫ہ‬
‫س‬
‫ب‬
‫ا پ ے و ع ن یت ر یی بو ر وہ یی ربف ے انی سے د ے ے ے ر ا ھ تے ن‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ت ی ‪ ،‬اسی سیی کو پرسہا پرس قیل جامعہ عوپتہ کے طلتہ کے ساتھ دنکھا تھا کہ فرانسنئے سے لگاے‬
‫ع‬
‫ساتھیون کے ساتھ جاڑہا تھا ‪ ،‬اج وہ انک طیم ابسان کی سکل منن عوام کے سا مئے تھا ‪ ،‬اوڑ‬

‫ابسانی کام ناپیان عرت و عظمت اس کے ماتھے کا حھومر پیی ہونی تھنن ‪ ،‬اج کے پروگرام کے بظم و‬

‫ہ ھ‬
‫ضیظ منن ان کی دابست ڑوج کا کام کرڑ ی ت ی ۔ ان کا وضع کردہ عرس کا اہیمام ‪ ،‬اپیطام و‬
‫م‬
‫ح‬
‫ق‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ق‬
‫ن‬
‫س‬
‫ک‬
‫پ‬
‫پ‬
‫پ‬
‫ابضرام اپیی میال ات تھا ۔ ے رے رے یرون یرون کی ر نون اوڑ راحی ے ا بسے‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫احیماعات منن جاضر ہو تے کا اکیر موقع ملا ‪ ،‬سرنک ڑہا ‪ ،‬مگر تہان حھ دوسرا ی ڑنگ تھا ۔‬
‫نک‬
‫‪ :‬کراحی کے حید پرے احیماعات خو منن تے د ھے‬
‫ع‬
‫حضرت قیلہ حطیت ا ظم ناکسیان کی موخودگی منن عید میلاد النیی کا جلوس بسیر ناڑک منن ۔ )‪1‬‬
‫قاظمہ حیاج کے حیاڑے کا احیماع ‪ ،‬خو بولو گراؤند منن پرھانا گیا ‪ ،‬اس منن َمنن موخود تھا ۔ )‪2‬‬

‫ل‬
‫لیکس حمع ک لیک‬
‫س‬
‫م‬
‫ک‬
‫ل‬
‫س‬
‫ئ‬
‫ن‬
‫ی‬
‫ب‬
‫ء منن سید سعادت ع ی قادڑی تے ا ن ‪ ،‬یت ے ا ن ے ے ر ناڑک ن ‪3) 1972‬‬
‫ت سظ‬
‫لیک‬
‫س‬
‫س‬
‫س‬
‫ّٰ‬
‫خ‬
‫ل‬
‫پ‬
‫ی‬
‫ن‬
‫اہل س ّٰنت و حماعت کا اجلاس نلانا خو سیدھ ھر کی خ ر تھا ‪ ،‬ا ی سال ون تے ا ن را و‬
‫تہاپت کام نات ڑہا ۔‬
‫ل‬
‫م‬
‫ل‬
‫ل‬
‫ع‬
‫وڑپر ا ظم ننئے پر تہ ی مرپتہ دوالققاڑ ع ی تھیو تے بسیر ناڑک منن عوا ی اجلاس نلانا اوڑ تہ ی )‪4‬‬
‫ع م‬
‫لق عل‬
‫م ملنس ک کی قیم سل قم‬
‫م‬
‫ھ‬
‫مل‬
‫ی‬
‫ت‬
‫ن‬
‫س‬
‫ی‬
‫ی‬
‫رپتہ یا ے رون یی واڑ ص ن وس دوا قاڑ ی و صاحت تے وا ی وت‬
‫ک‬
‫س‬
‫ل‬
‫ع‬
‫ھ‬
‫ک‬
‫ب‬
‫ئ‬
‫ع‬
‫میعاڑف کرانا ‪ ،‬یخ سعدی فرما تے ہنن کہ ’’ الیاس ع ی دپن ملو م‘‘ یی وام ا پ ے حکام ے‬
‫م‬
‫ھ‬
‫طر بقے کی نیروی کر تے ہنن ‪ ،‬لہدا بہ تہت مسہوڑ ہوے اوڑ لرکیون تے ت ی بہ عوا ی سوت تہنیا‬
‫سروع کردنا ۔‬

‫ک‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫ع‬
‫حطیت ا ظم ناکسیان کے حیاڑے کا احیماع ت ی تھربوڑ تھا کہ ھوے سے ھوا حھل ڑہا تھا ۔ )‪5‬‬
‫ک‬
‫اوکاڑوی صاحت ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کے وصال کو ‪ 22‬سال گرڑ گئے ‪ ،‬منن دن ھیا ڑہیا ہون اپیی )‪6‬‬
‫گ‬
‫ک کم‬
‫م‬
‫ی‬
‫ق‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ھ‬
‫ہ‬
‫ب‬
‫ن‬
‫ک‬
‫ک‬
‫پ‬
‫ح‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ت‬
‫س‬
‫ھ‬
‫مدت کے بعد حید دوست احیات ر ر ع و ر وڑا د ر و ادکاڑ ر ے ر وجا تے ن ‪ ،‬ن‬
‫م‬
‫ک تھ من م‬
‫ح‬
‫گ‬
‫پ‬
‫ھ‬
‫ج‬
‫ہ‬
‫ح‬
‫گ‬
‫ق‬
‫ی‬
‫جا پئے کہ ے طعا بہ مان بہ تھا کہ ا یی مدت رڑ جا تے ے بعد ی ن و رت ون ‪ ،‬اپیا‬
‫ہ‬
‫پرا احیماع ‪ ،‬بہ حضرت کی ڑندہ کرامت ی کہہ سکئے ہنن ۔‬
‫ع‬
‫ا پئے پرے طیم احیماع کا اپیطام علامہ داکیر کوکت بوڑانی کے ہاتھ منن تھا حش منن کونی‬

‫ہ‬
‫ھ‬
‫م‬
‫اپیطا ی بقص نلاس کر تے کے لئے بگاہ دالی جانی ت ی بو نلا بقص ناے ی جالی لوت انی تھنن ‪،‬‬
‫ک‬
‫م‬
‫ھ‬
‫اگرجہ وہان تہیرپن ماصی و جال ڑ ھئے وا لے علما کرام ت ی تھے مگر بہ حقیقیا عوا ی احیماع تھا‬
‫ہ‬
‫حش منن ہر طرج کے بوڑ ھے ‪ ،‬خوان ‪ ،‬ہم سن کم سن ‪ ،‬حھو تے پرے ‪ ،‬ست ی تھے ۔ تماڑ منن‬

‫کس ک‬
‫ہ‬
‫ناجیر ہونی بو ساند ی تے حھ کہا ‪ ،‬منن تے بو داکیر صاحت کی ڑنان سے اپیا ی ُسیا کہ ات قکر مید بہ‬
‫س ھ‬
‫ہو پئے ‪ ،‬ان منن سے انک حص ت ی تہنن اتھے گا اوڑ بہ جاے گا ۔‬
‫َم ک‬
‫ک لئ ل ک‬
‫محھ ہ‬
‫ھ‬
‫سک‬
‫ش‬
‫ئ‬
‫ک‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫ھ‬
‫تماڑ ہونی اوڑ صلوہ و سلام ے ے وگ رے وے بو ن تے ے کی و ش کی ے ی‬
‫ل ہ ھ‬
‫ھ‬
‫پیا ہے کہ َمنن سیرھیون نک تہیجا بو ات ی نک لوگون کی امد تھربوڑ طر بقے سے ج ی اڑ ی ت ی‬
‫تھ‬
‫ہ گ تھ‬
‫ہ ق یمل‬
‫ل‬
‫کل‬
‫ن‬
‫ئ‬
‫پ‬
‫ہ‬
‫س‬
‫تہان نک کہ ولی ی ا نیال نک نا ر ب ے کی جگہ ر ر بہ ی ‪ ،‬بو ش تے جاڑی ی ری‬
‫ھ‬
‫بعداد منن موخود ت ی ‪ ،‬حسے عوام تے دبواڑ سے لگا دالا تھا ۔‬

‫حضرت صاحت ڑادہ صاحت علامہ داکیر خوپییر حطیت ناکسیان ات کو عرس کے جلسے کے )‪7‬‬
‫لل‬
‫تہیرپن اپیطام کر تے پر سلام ننش کرنا ہون ‪ ،‬اوڑ ’’ ا ہ ّٰم ڑدفرد ‘‘ کی دعا کے ساتھ بہ سوحیا ہون‬
‫کہ بہ بو اپیداء ہے ‪ ،‬اپیہا کیا ہوگی ۔‬

‫عل‬
‫ح‬
‫م‬
‫م‬
‫ک‬
‫س‬
‫س‬
‫منن تھر ات کے ت مل ‪ ،‬بق ّٰصل اوڑ ی وقاڑ اوڑ رت سے رساڑ کاڑ یان ‪ ،‬دبوا تے قطاڑ اندڑ قطاڑ‬
‫حن کے حہرون پر تہاڑ ‪ ،‬بہ دل کش ڑوبق اوڑ صاحت مراڑ کے قیوص و پرکات کے بطاڑے تھے کہ‬
‫م‬
‫ہ‬
‫مسجد سربف کے اندڑ داجل ہو تے ی بون حسوس ہونا ہے جنسے مسجد پیوی منن داجل ہو جکے‬
‫ھ‬
‫ہون ‪ ،‬ات تے انک مرپتہ ت ی عام لوگون کی طرج بہ تہنن کہا کہ حضرات ہم معاقی جا ہئے ہنن ‪،‬‬
‫ک‬
‫ک‬
‫دڑا ناجیر ہوگیی ہے ‪ ،‬ات حید میت اوڑ مرند بسربف ڑ ھئے ۔ ات تے حھ کہا بو ضرف بہ کہ قکر بہ‬

‫ھ‬
‫کرپن ان منن سے انک پیدہ ت ی بہ اتھے گا ‪ ،‬اتھیا بو دڑکیاڑ بون لگیا تھا کہ عوام بو انک دن اوڑ‬
‫ھ‬
‫ت ی اپیی جگہ سے جا تے کو پیاڑ بہ تھے ۔‬

‫بہ ست دنکھ کر تہاپت خوسی جاصل ہونی ‪ ،‬دل سے دعاننن بکلنن ‪ ،‬ال ّٰلہ ڑت العرت سے دعا ہے کہ‬
‫ل‬
‫جداوند کرتم ات کے مر پئے کو نلید فرماے ‪ ،‬امنن تجاہ النیی الکرتم علتہ الیحتہ وا نسلیم ۔‬
‫م‬
‫خرڑہ ‪ :‬قیی ابو الیضر علام فرند حسیی‬

‫جاک ناے حطیت ناکسیان ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ‬
‫مکان تمیر ‪ ، 04/20‬نلاک ‪، 2‬‬
‫‪ ،‬پرد نیراداپرد پیکری ‪ III ،‬مییروول‬
‫گل‬
‫لح‬
‫س‬
‫س‬
‫ق‬
‫ک‬
‫ض‬
‫ق‬
‫ابوا ن ا ہانی ڑود ‪ ،‬ن ا یال ۔ راحی‬
‫میقیت دڑسان‬
‫م مح سق‬
‫ل‬
‫ی‬
‫ع‬
‫ل‬
‫عل‬
‫ق‬
‫ولانا مد ع اوکاڑوی تہ ا رحمہ وا ران‬
‫م‬
‫عل گ ہ‬
‫ل‬
‫س‬
‫م‬
‫ع‬
‫ک‬
‫ک‬
‫س‬
‫ج‬
‫ک‬
‫ن‬
‫س‬
‫ع‬
‫ی‬
‫ب‬
‫ی‬
‫رم حیات سید ا م رالی راحی ن ’’ رج قاؤن دے ن ‘‘ ے وان سے م و ا ی ے‬
‫سیگ ھ‬
‫خراع ڑوسن کئے ڑ ہئے ہنن ‪ ،‬علما و مسا تخ اہل س ّٰنت سے ان کی واب ی ت ی خوت ہے ۔ ‪22‬وان‬
‫م‬
‫ھ‬
‫سماڑے منن ان کی تجرپر ہم تے سامل کی ت ی ‪ ،‬ان کی اہلتہ جیرمہ خوس کلام ساعرہ ہنن ‪ ،‬بعت‬
‫ک‬
‫ع‬
‫و میاقت ہیی ہنن ‪ ،‬اتہون تے ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم علتہ الرحمہ سے اپیی عقیدت‬
‫م‬
‫کہ‬
‫ن‬
‫م‬
‫ہ‬
‫ہ‬
‫ق‬
‫ن‬
‫ی‬
‫ن‬
‫و حیت کو میطوم کیا ہے ۔ ان کے سکربہ کے ساتھ ان کی ی ونی یت دڑ قاڑ ن ے ۔‬
‫ہ‬
‫ناطل کے سا مئے و ی ‪ ،‬مرد کمال تھا‬

‫حش کے لیون بہ خرف صداقت تجال تھا‬
‫قکر اداے فرص منن مضروف دم ندم‬
‫ناڑ تھا خو سہئے کو خق کے لئے سیم‬
‫الجاد و کقر کے لئے سمسیر تے پیام‬
‫احیات کے لئے تھا سرانا وہ اجیرام‬
‫ہ‬
‫ُاس عاسق ڑسول منن اوصاف کا حوم‬
‫جنسے قلک بہ بوڑ سے نانان مہہ و تحوم‬
‫گہ‬
‫تجرپر سے ہوندا ہے عرقان و ا ی‬
‫س‬
‫بقرپر اب ی جنسے اپرنی ہو ڑوسیی‬
‫اسعاڑ کی ڑنان منن بوضیف ساہ دپن‬
‫اواڑ کے گداڑ منن موخود اک بقنن‬
‫ہے دکر کرنلا منن وہ انداڑ گقیگو‬

‫میظر اتھر ڑ ہے ہنن سہادت کے جاڑ سو‬
‫س س‬
‫ل‬
‫ھ‬
‫پرم حن بو حیی ہے یکن ات ی نلک‬
‫ان کی جگہ بہ لے سکا کونی تہہ قلک‬

‫تھ حط کم‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ہنن اوڑ ی یت ی ت تہان ونی‬
‫ل ق‬
‫یکن س یع اوکاڑوی جنسا کہان کونی‬
‫ھ‬
‫نادون کی سمع ؒ دل منن فروڑان ہے اج ت ی‬
‫ھ‬
‫مرقد بہ ابسوؤن کا خراعان ہے اج ت ی‬
‫ق‬
‫اڑ ‪ :‬سمع صدب ی‬
‫ع‬
‫ان ساء ال ّٰلہ بعالی ‪ ،‬حضرت حطیت ا ظم ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کا ‪ 58‬وان سالابہ مرکری دو ڑوڑہ عرس‬
‫حط ع‬
‫لم‬
‫ظ‬
‫میاڑک حمعرات ‪ ،‬حمعہ ‪ 58-50‬میی ‪2805‬ء اوڑ ‪ 58‬وان سالابہ عا ی بوم یت ا م‬
‫حمعہ ‪ 50،‬میی ‪2805‬ء کو میانا جا تے گا ۔‬

‫میطوم ہدبہ عقیدت‬
‫ع‬
‫م ق‬
‫حطیت ا ظم حضرت علامہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ‬
‫م‬
‫اڑ ‪ :‬داکیر حمد مسرف حسنن اتحم‬
‫ھ‬
‫وہ ادپت سیرپن ڑنان ت ی تھے‬
‫ھ‬
‫وہ صداقیون کا بسان ت ی تھے‬
‫وہ حسنن تھے واعظ خوس پیان‬
‫وہ حسنن تھے عالم تے ندل‬
‫ع‬
‫وہ حسنن تھے عالم نا مل‬
‫وہ بسے ہنن قلت کے دہر منن‬
‫وہ بسے ہنن سوج کی لہر منن‬
‫خو قلم تھا ات کے ہاتھ منن‬

‫وہ قدا تھا عسق ڑسول پر‬
‫وہ قدا تھا طنتہ کے تھول پر‬
‫نک‬
‫وہ خو خوس بوننن ھرا گئے‬
‫! وہ سنق حصوڑ کے عسق کا‬
‫پرے پیاڑ سے خو پرھا گئے‬
‫ہ‬
‫و ی ست کی انکھ کا بوڑ ہے‬
‫ہ‬
‫و ی بوے ڑنگ سعوڑ ہے‬
‫س ع‬
‫ع‬
‫حیات یخ قیل احمد ‪ ،‬کراحی بونی وڑسیی سے ہماڑے قیلہ عالم حضرت حطیت ا ظم پر نی ۔ ا تخ ۔‬
‫ھ‬
‫ھ‬
‫دی کرڑ ہے ہنن ۔ اتہون تے اڑ خود ت ی میعدد سحصیات کو حطوط ت یحے ہنن اوڑ ڑا بظے کئے ‪ ،‬ان‬
‫کس‬
‫کاکہیا ہے کہ ان کے مقا لے منن ان سے بعاون کیاجاے ۔ ی کے جا قظے منن کونی اہم نات نا‬

‫کس‬
‫ی کے ناس کونی تجرپر اوڑبصوپر ہو بو اتہنن فراہم کی جاے ۔ ہماڑی گراڑس ہے کہ ملک و‬
‫م‬
‫نیرون ملک اہل علم اوڑ اہل حیت و عقیدت اپیی نادداست اس خوا لے سے ضروڑ تجرپر فرماننن‬
‫س ع‬
‫اوڑ حیات یخ قیل احمد سے بعاون فرماننن ۔ ڑابطہ‪0023000-8588:‬‬

The late Haaji Muhammad Haneef Naqshbandi is the son
of Haaji Muhammad Lateef. His family was very devoted
to the respected Hazrat Khateeb-e-A’zam (Rahmatul
Laahi Alaieh). In the 11th annual Urs magazine of 1994,
he wrote a tribute titled “Laasaani Peer Kay Laasaani
Mureed”. It has been translated below from Urdu for our
English readers – T.Y. Qaadiri

The Exceptional Disciple of an Exceptional Spiritual
Master

In the city of Sharqpur Shareef the esteemed Hazrat
Shayr-e-Rabbaani Miyaan Shayr Muhammad Saahib
(Allaah have mercy on him) was a great holy man and
spiritual succor (Ghaus) of his time. This incomparable
and honorable Hazrat Miyaan Saahib gave the glad
tidings of a personality to be born who would be of great
status and grandeur. To give an idea of how much

Almighty Allaah blessed this personality I narrate these
words with total honesty and confidence.

My respected Hazrat Saahib Qiblah Maulana Muhammad
Shafee Okarvi (Allaah have mercy on him) is remembered
with the titles of Khateeb-e-A’zam7 Ameer-e-Ahle Sunnat,
Mujaddid-e-Maslak-e-Ahle Sunnat, Ghaazi-e-Deen-oMillat, Muhaafiz-e-Naamoos-e-Risaalat and so on.
People may think he was merely a unique orator and
writer but I can say with complete honesty and sincerity
that Hazrat Maulana Okarvi was truly a beloved of
Almighty Allaah and the holy Prophet (Sallal Laahu
‘Alaiehi Wa Sallam). He was a friend of Allaah and a
beautiful individual with many qualities. He was
dignified and had very pleasant personality. He was not
just one in a thousand or a million, rather he was one in a
billion. Almighty Allaah made him excellent and elegant
in appearance and nature and he alone undertook work
that thousands of organizations and religious schools
(Madaaris) combined could not do. The splendor and
merit of the Ahle Sunnat seen today is the result of the

efforts and struggles of our Hazrat Maulana Okarvi
Saahib.

When he left this world, he took all joy with him and now
Karachi seems lifeless without him. Even some of our
own people resented and envied him because of the
Divine qualities bestowed on my Hazrat Qiblah Okarvi
Saahib. Rarely would he say anything after hearing their
words but when he did it was7 “All [these people] will
remember me and will mourn.” Ten years have passed
since Hazrat Okarvi Saahib left this world and still people
say his absence is desperately felt. We were busy
talking, Hazrat would work. Today everyone remembers
him and grieves.

For the past four generation, he was the religious and
spiritual guide as well as a holy man in my family. My
elders consider him their guide and leader. Moreover, I
have heard my elders say they had never seen or heard
an orator like Hazrat Maulana Okarvi in their lives. That
is why we can truly say that my Hazrat Qiblah Okarvi

Saahib was an exceptional and distinct speaker and
narrator. Only once in a century does someone like him
appear. He was a unique disciple of an exceptional guide
and Allaah turned this unique disciple into a perfect
guide. I have seen and heard Hazrat Okarvi Saahib for
quite awhile and could perhaps compile an entire book if
I wrote all I remember. However, I will only write about
a few incidents I have witnessed.

1.) My sister, Rubina was eight years old at the time
and as usual, would go to school every day. One day the
school teacher sent some boys to our house saying,
“Your daughter fainted so come and get her”. In great
distress, my mother and sisters immediately ran to the
school. We also came home from the market after
receiving the news. My mother and sisters brought her
home. She was unconscious and appeared as though
lifeless. A local doctor was brought home who said,
“Take her to the hospital immediately. You must not
delay.” So at once7 we reached the hospital where the
doctors examined her. The doctors tried to give her an
injection but when they attempted to give it this

unconscious girl resisted so strongly that even six men
collectively could not control her. The doctors tried
various methods but could not succeed in giving her the
injection. Finally, the doctors disappointed us by saying,
“We are sorry but we couldn’t inject her and couldn’t
revive her.”

We were so angry. The doctors had only proved their
incompetence by expressing their regrets. What could
we achieve by getting anger? When anger is mixed with
misery, no proper thought comes to mind. We became
suspicious that she might be under the effect of some
magic or jinn. When disappointed with world, a person
remembers Allaah. Since she could not get medical
treatment7 some kind of du’aa (supplication) had to be
done for her. I thought of my Hazrat Qiblah Okarvi
Saahib. Everyone said to talk to him immediately. He
was the center of everyone’s hope. My mother began to
say7 “I don’t know why we did not think of him before.”

I immediately called Hazrat Okarvi Saahib. Perhaps due
to his extensive religious research and other
commitments Hazrat Qiblah Okarvi Saahib did not write
ta’weez (protective amulet) or exorcise ill effects like
others who did it professionally. Hazrat Qiblah Okarvi
Saahib said7 “I will pray. May Allaah Kareem cure this girl
and I advise you to take her to a well-known peer saahib
in Karachi.” I had heard the claims and stories of this
peer sahib, whose name I will not mention, dealings with
Jinns. I requested that Hazrat Qiblah Okarvi Saahib to
contact this peer saahib on our behalf. Hazrat Qiblah
Okarvi Saahib said7 “You go there. I will inform him
about you.”

We immediately went to the spiritual center (aastaanah)
of this peer saahib. We were in immense distress and
disturbance. Every moment felt like doomsdays. We
waited nearly three hours there to meet the peer Saahib.
Time passed with great difficulty. The peer saahib saw
the girl, did damm (read some verses and blew air on
her) and gave a ta’weez but no benefit was evident on
her. The peer sahib did damm a few times to dispel the

illness but there was no affect and I was disappointed.
The peer saahib said7 “Take this girl home. She will be
fine when she goes home”.

It was almost evening when we reached home and my
sister did not regain consciousness and the whole day
worn on in depression. Again, I called the esteemed
Hazrat Maulana Okarvi Saahib and gave him all the
details and I requested to bring my sister to him. He
agreed and I went straight to Hazrat Maulana Okarvi
Saahib’s home. I lay my unconscious sister on a bed in
his house. Hazrat Maulana Okarvi Saahib came from his
sitting room and held her little finger in his hand. He
may have read something quietly but I did not see it.
Under oath I say this that it was only a matter of the
touch of Hazrat Okarvi Saahib’s hand and she instantly
regained consciousness and sat up fully revived. Tears of
happiness glittered in my eyes and I said7 “Why did you
send us elsewhere? The whole day we were worried and
coming to you our misery is dispelled with the blink of an
eye, Maa Shaa Allaah!" Hazrat Maulana Okarvi Saahib
said7 “There is nothing to worry about. With the Grace of

Allaah this girl is absolutely fine.” I insisted that a
ta’weez be given so that my sister would not faint like
this again. Hazrat Okarvi Saahib said7 “Rest assured and
take the girl. In Shaa Allaah she will be fine and if
required I will write a ta’weez later.” Al Hamdu Lil Laah7
we came home happy. To this day, my sister is fine. Maa
Shaa Allaah! Hazrat Okarvi Saahib never gave any
ta’weez nor was it required7

2.) I had this reoccurring problem where small boils
would appear on parts of my body and would rupture,
meaning pus would come out. I tried different medicines
from the doctors but this condition would not go away. I
was exhausted with the doctors. One day I called Hazrat
Qiblah Okarvi Saahib and during the conversation, I
apologized that I could not visit and mentioned this
illness. I requested that he keep his gracious glance on
me as I was always upset because of this complaint and I
was not getting any proper comfort from any medicine.
The respected Hazrat Okarvi Saahib said7 “I will tell you a
simple and small wazeefah (verses to read as a daily

practice). If you read regularly you will never need any
medicine or doctor.”

Hazrat Qiblah Okarvi Saahib taught me the small
wazeefah and the methodology of reading it. I followed
his instructions and surely Allaah bestowed graciousness
and my ailment started disappearing. Now when I follow
the same practice on any other sick person he is also
cured with the Grace of Allaah, to the extent that even
severe wounds are also healed. Anytime I told Hazrat
Maulana Okarvi Saahib any of my miseries or difficulties,
he would just say7 “Do not worry7 Allaah Kareem will
bestow kindness it will be fine.” And indeed success
would come.

3.) I once had the chance to go to Paak Pattan Shareef
with the respected Hazrat Okarvi Saahib. We travelled
by train and reached Sahiwal in the morning and from
there we went to Paak Pattan Shareef. Those who have
had the pleasure of Hazrat Qiblah Okarvi Saahib’s
company will know very well that you do not feel the

journey while travelling with him. Sometimes he would
narrate the events of his own spiritual leader and other
times events about other respected Friends of Allaah.
Sometimes he would teach many important issues with
questions and answers. Moreover, when another scholar
travelled along the discussion would be very academic. I
was travelling to Paak Pattan Shareef for the first time. I
had heard of the renown of Hazrat Saiyyidinaa Baabaa
Fareed Ganj e Shakar (Allaah be pleased with him) from
Hazrat Qiblah Okarvi Saahib. I was overjoyed to visit this
great sacred shrine in Hazrat Maulana Okarvi Saahib’s
company
We reached Paak Pattan Shareef in the night having
spent the whole day in Sahiwal. There too Hazrat Qiblah
Okarvi Saahib has many devotees as he used to lead
Friday prayers in Sahiwal’s Muhaajireen Masjid before
coming to Karachi. The degree of love and devotion
exhibited by the people of Sahiwal when he announced
his departure to Karachi may never have been seen for
anyone else before. People lay on the railway tracks with
the intention of stopping Hazrat Qiblah Okarvi Saahib
from leaving. With the Grace of Allaah Kareem, my

Hazrat Maulana Okarvi Saahib is well-known and loved
everywhere
The silence of the night had spread in Paak Pattan
Shareef and it was approximately 10 pm although in this
area, it seemed as if it was midnight. Hazrat Qiblah
Okarvi Saahib said7 “We have to pay homage at the
sacred shrine of Hazrat Baabaa Fareed (Allaah have
mercy on him) before sitting in the house”. Hazrat
Okarvi Saahib kept his luggage at his dear sister’s home
where he met close relatives who were present. From
his respected sister’s house7 he started walking towards
the holy court of Baabaa Fareed. As we reached the
boundaries of the sacred shrine, [we saw] the doors of
the hujrah (sacred chamber) were already locked and the
khaadim (caretaker) was returning after locking them.
Seeing us he said7 “The door is locked. You can come in
the morning.” It was my first visit and I was desperate.
Hazrat Qiblah Okarvi Saahib said to the khaadim7 “Let us
only give our salaam (salutations).” However7 the
khaadim would not listen. Hazrat Qiblah Okarvi Saahib
said7 “It does not matter if we say salaam from outside7
these walls are no veil for Hazrat Baabaa Saahib.”

Therefore, from a distance Hazrat Maulana Okarvi Saahib
stood with his arms folded and presented salaam.
However, I was deeply disheartened and depressed as I
had come with great devotion and love. I felt very
dejected because I was denied my first visit to the sacred
shrine. Hazrat Qiblah Okarvi Saahib was still busy in
salutation while the khaadim who had locked the doors
was standing near the hujrah, perhaps he was waiting for
us to leave. Suddenly he sprinted to the door as if
someone had called him. Then he walked quickly
towards Hazrat Qiblah Okarvi Saahib and asked7 “Are you
Maulana Okarvi Saahib? Please come, Hazrat Baabaa
Saahib is calling you.” He opened the doors of the sacred
hujrah. At that instant I began to shiver. I was in a
strange state of happiness. For the first time in my life, I
was witnessing a miracle with my own eyes.

Such a man of high grandeur and status was my Hazrat
Maulana Okarvi Saahib. How beloved he was of Allaah
and the people of Allaah. Hazrat Okarvi Saahib had a
secret conversation with the respected Baabaa Saahib

and yet he was also paying respect; a model of
humbleness and humility. I, on the other hand, was in a
peculiar state of elation. Hazrat Okarvi Saahib did some
recitation, supplicated then kissed the holy grave and
said7 “Let’s go” but I did not feel like leaving. The
khaadim told us7 “Baabaa Saahib took the name of
Maulana Okarvi Saahib and ordered the door be opened
for him.” He shook Hazrat Maulana Okarvi Saahib’s hand
with great devotion. The delight of this occasion
endured for a long time and left a lasting impression in
my heart. I think there are few people who are chosen
like my respected Maulana Okarvi Saahib. Not every
scholar or orator gets such acceptance and honor.
Undoubtedly, he was a perfect Friend of Allaah, a
portrait of truth and sincerity.

Hazrat Qiblah Okarvi Saahib passed away a short while
after this. On his departure my tears were never ending,
he left the whole city deserted. Hazrat Baabaa Jee
Karmaa'n Waalay said7 “The state of the city of Karachi
after Maulana Okarvi Saahib is like that of a woman who
has lost her husband.” When Hazrat Qiblah Okarvi

Saahib was in Karachi there were gatherings every day,
there was cheerfulness. Even after his departure, I
remember him when I have any worldly worry and beg
him for help and am benefitted from his spiritual powers.
Most often, I see the respected Hazrat Qiblah Okarvi
Saahib in my dreams smiling in luminous attire. Once in
a dream, I saw him present in the Friday prayer
congregation in Jaame Masjid Gulzar-e-Habeeb. After
performing his salaat, he went to his sacred tomb and
said to me7 “I am very peaceful here.”

My Hazrat Maulana Okarvi Saahib would shower such
kindness while he was alive in this world, I do not have
the words to describe it. Al Hamdu Lil Laah from
everything he taught me I received bounties and benefits
and have succeeded at every stage.

4.) Hazrat Maulana Okarvi Saahib once had a program
in Thatta (Sindh) and I had the opportunity to accompany
him. He spoke openly of the wrongful beliefs of the
Shiites sect according to Qur’aan and Sunnah. During his

speech, threats written by opponents on slips of paper
were passed forward that said7 “You will not be going
back from here today.” Hazrat Qiblah Okarvi Saahib
completed his speech very peacefully. I was disturbed by
the threats from these opponents and was afraid. After
the speech, I requested Hazrat Qiblah Okarvi Saahib,
“Stay here overnight7 at dawn we will go back to Karachi
so there will be no danger.” Hazrat Qiblah Okarvi Saahib
said7 “No7 we will definitely go back right now”. It was
Hazrat Qiblah Okarvi Saahib’s habit to immediately
return [back home] after functions, even if it required
travelling at night. I was uneasy to the extent that
driving was difficult. Respected Hazrat Maulana Okarvi
Saahib sat next to me in the car and said7 “Drive
peacefully7 don’t be scared. In Shaa Allaah everything
will be fine.”

It was a miracle of my Hazrat Maulana Okarvi Saahib that
we reached Karachi safe and sound even though I
suspected some evil person would try to harass or harm
him but Allaah Kareem protected him. In such situations,
he would tell his close friends that the holy Prophet

(Sallal Laahu ‘Alaiehi Wa Sallam) has assured him7 “No
one will be able to kill you.” How devoted he was to his
beloved holy Prophet (Sallal Laahu ‘Alaiehi Wa Sallam)
and how strongly he trusted him (the beloved holy
Prophet Sallal Laahu ‘Alaiehi Wa Sallam).

5.) I was very happy to hear that three or four years
ago my Hazrat Qiblah Okarvi Saahib’s successor Allamah
Kaukab Noorani Saahib, his eldest son, went to pay
homage to different holy shrines in Delhi (India)
accompanied by some visitors from South Africa and a
Saiyyid Saahib from Karachi. When he reached the
shrine of Hazrat Khawaajah Baaqi Billaah (Allaah have
mercy on him), after visiting other shrines, it was night
and the khaadimeen (caretakers) were closing the door
of the boundary wall. I heard that Kaukab Saahib said to
these khaadimeen7 “We have to return home in the
morning. Let us only give our salaam (salutations).”
However7 the khaadimeen said7 “This shrine cannot be
opened after it is closed until morning and never has it
been opened before morning.”

Kaukab Saahib said7 “He is my peer (spiritual master)7
how can he disappoint me?” The South African visitors
were sad that they came so late and could not pay their
respects. Kaukab Saahib said to the guests7 “It is our
mistake that we were delayed, you can present your
salutation and pray from here [outside].” During this
time a majzoob (a person drawn towards Allaah with
divine mediation) sitting inside by the shrine called loudly
one of the khaadim and said7 “Khawaajah Saahib says to
open the doors for the Maulana.” Therefore7 the
khaadim opened all the locks and said that this was the
first time in his life that the sacred shrine has been
opened immediately after closing at night. Thanks to
Almighty Allaah, the spiritual powers and blessings of my
Hazrat Qiblah Okarvi Saahib carries on to his successor.
The mission of my Hazrat Maulana Okarvi Saahib
continues in the same way by Brother Kaukab Saahib.

Many years have passed yet he is remembered and
praised everywhere. I miss my Hazrat Qiblah Okarvi
Saahib a great deal. To this day I still wonder why he left
us so soon…….

‫‪Haaji Muhammad Haneef Naqshbandi‬‬
‫‪Karachi, 1994‬‬

‫علاج نالعدا‬
‫کہ ھ‬
‫اج سے تجاس سال قیل ڑاندھیر ( تھاڑت ) کے انک جکیم صاحت تے ی ت ی‬
‫ھ‬
‫خو ساعر ت ی تھے ۔‬

‫حہان نک کام جلیا ہو عدا سے‬

‫وہان نک جا ہئے تحیا َدوا سے‬
‫اگر خون کم پئے ‪ ،‬نلعم ڑنادہ‬
‫بو کھا گاخر ‪ ،‬حَئے ‪ ،‬سلعم ڑنادہ‬
‫جگر کے َنل بہ ہے ابسان جنیا‬
‫اگر ضعف جگر ہے کھا پینیا‬
‫م‬
‫جگر منن ہو اگر گر ی کا احساس‬
‫ربہ املہ کھا نا اپی ّٰاس‬
‫م ّٰ‬
‫اگر ہونی ہے معدہ منن گرانی‬
‫بو نی لے سوبف نا ادڑک کا نانی‬
‫تھکن سے ہون اگر عصلات دھیلے‬

‫بو قوڑا دودھ گرما گرم نی لے‬
‫ک‬
‫خو ُد ھیا ہو گلا پر لے کے ماڑے‬
‫بو کر تمکنن نانی کے عراڑے‬
‫اگر ہو دڑد سے داپیون کے تے کل‬
‫ل‬
‫بو ابگ ی سے مسوڑھون پر تمک َمل‬

‫م کم ہ ہ م‬
‫ح‬
‫س‬
‫خو طاقت نن ی ونی و وس‬
‫بو مضری کی َدلی ملیان کی خوس‬
‫س‬
‫سقا جا ہئے اگر کھاب ی سے جلدی‬
‫بو نی لے دودھ منن تھوڑی سی ہلدی‬

‫ک‬
‫اگر کابون منن حھ بکلیف ہووے‬
‫بو سرسون کا پیل تھاے سے تحوڑے‬
‫نک‬
‫اگر ا ھون منن پرجا تے ہون جا لے‬
‫َ کھ م گھ‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ک‬
‫بو د یی رج ی ے ساتھ ھا ے‬
‫پت دق سے اگر جا ہئے ڑہانی‬
‫ندل نانی کے گیَّا خوس تھانی‬
‫ھ‬
‫دمہ منن بہ عدا تے سک ہے اح ی‬
‫م‬
‫حھ‬

‫ک‬
‫ھیانی حھوڑ کھا دڑنا کی ی‬
‫اگر تحھ کو لگے جاڑے منن سردی‬

‫بو اسنعمال کر اندے کی ڑڑدی‬

‫خ ہضم‬
‫م‬
‫َ‬
‫ہ‬
‫ن‬
‫و ند ی ن بو جا ے اقاقہ‬
‫بو دو اک وقت کا کر لے بو قاقہ‬

‫ہم ُخرما و ہم بوات‬
‫م‬
‫ح‬
‫م‬
‫س‬
‫ص‬
‫ُ‬
‫س‬
‫ح‬
‫مل‬
‫س‬
‫ی‬
‫پ‬
‫مجدد مسلک اہل س ّٰنت ‪ ،‬ن ملک و ت ‪ ،‬عا ق ڑ ول (ﷺ) ‪ ،‬ت جابہ و ال ول ‪،‬‬
‫م‬
‫ع‬
‫م ق‬
‫حیوت اولیاء ‪ ،‬حطیت ا ظم ناکسیان حضرت الجاج علامہ قیلہ مولانا حمد س یع اوکاڑوی قدس سرہ‬
‫س‬
‫الیاڑی و ڑحمہال ّٰلہ بعالی علتہ تے حصوصی اجاڑت سے بہ اعلان فرمانا تھا کہ حش حص کو کونی‬
‫جاحت ہو بو وہ دو ڑکعت بقل ( تماڑ جاحت ) پرھ کر ال ّٰلہ بعالی سے دعا کرے کہ ‪ ( 505‬ننن سو‬
‫ع‬
‫ط‬
‫نیرہ ) اصجات ندڑ ڑصی ال ّٰلہ بعالی یہم احمعنن کے قیل میری جاپر جاحت بوڑی فرمادے بو‬
‫ُ‬
‫َمنن ‪ 505‬ڑو تے اصجات ندڑ کی طرف سے جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت (ﷺ) گلسیان اوکاڑوی‬

‫ع‬
‫ل‬
‫(سابق سو جر ناڑاڑ) کراحی کی ب میر منن دون گا ۔ ان ساء ال ّٰلہ اس کی جاحت بوڑی ہوجا تے گی ۔‬

‫ع‬
‫ل‬
‫ا حمد ل ّٰلہ ! حضرت حطیت ا ظم ناکسیان ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی اس بساڑت سے ات نک ہراڑون افراد‬
‫ھ ع‬
‫ہ‬
‫ق‬
‫یص نات ہو جکے ہنن ‪ ،‬لوگون کا جاپر کام ہوجانا ہے اوڑ مسجد ت ی ب میری مراجل ظے کرڑ ی ہے‬
‫ھ‬
‫اوڑ صدقہ جاڑبہ کا بوات ت ی تحمدہ بعالی ملیا ہے ۔ حضرت مولانا اوکاڑوی ڑحمہ ال ّٰلہ علتہ کی اس‬

‫ھ‬
‫ُ‬
‫ڑندہ کرامت سے ات ت ی اپیی مسکل ُدوڑ کرسکئے ہنن ۔ مسجد گل ڑاڑ جنیت (ﷺ) کراحی سہر کی‬
‫ع‬
‫قدتم اوڑ پری مساجد منن اپیی میال ات ہے ۔ اس کی ب میر منن بعاون فرماننن ۔ ال ّٰلہ بعالی ات‬
‫کو خرا تے جیر عطا فرما تے ۔‬
‫ُ‬
‫گل ڑاڑ جنیت پرست‬
‫ل‬
‫دولی کھانا ‪ ،‬گلسیان اوکاڑوی ( سو جر ناڑاڑ ) کراحی‬
‫) قون تمیر ‪820 ( 5 2352 223 :‬‬

‫اطلاع‬

‫ملک تھر سے خو لوگ جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت ‪ ،‬جامعہ اسلامتہ گل ڑاڑ جنیت اوڑ مراڑ سربف‬
‫ع‬
‫مولانا اوکاڑوی کی ب میر و پرقی کے لئے عطیات تھیحیا جاننن ‪ ،‬ان کے لئے ’’ ان لاپن ننیکیگ ‘‘ کی‬

‫ہ‬
‫ہ‬
‫وجہ سے بہ سہولت ہوگیی ہے کہ وہ ا پئے ی علا قے منن موخود بوناننید ننیک لمنید کی پرا تخ ی منن‬
‫ہماڑا اکاؤپت تمیر اوڑ پرا تخ کود تمیر دڑج کر کے ڑقم حمع کرواسکئے ہنن ‪ ،‬اس طرج اتہنن میی اڑدڑ‬
‫کیھ‬
‫ع‬
‫ط‬
‫نا ننیک دڑاقت پیوا تے کی ضروڑت تہنن ہوگی ۔ ان احیات سے گراڑس ہے کہ حت ی یات‬
‫م ن ہ‬
‫ض تھ‬
‫م‬
‫م‬
‫ح‬
‫ق‬
‫س‬
‫پ‬
‫ن‬
‫ن‬
‫ن‬
‫سل‬
‫ح ع کروا نن ن نیک دپیاڑت ت کی وبو ا نیت کانی روڑ واد ن ناکہ حسات ن‬
‫دسواڑی بہ ہو ۔‬
‫جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت ‪-1‬‬
‫‪ : A/c # 010-2024-7‬اکاؤپت تمیر‬
‫‪ : ( UBL ) 0699‬پرا تخ کود تمیر‬
‫جامعہ اسلامتہ گل ڑاڑ جنیت ‪-2‬‬
‫‪ : A/c # 010-2619-5‬اکاؤپت تمیر‬
‫‪ : ( UBL ) 0699‬پرا تخ کود تمیر‬

‫مراڑ سربف مولانا اوکاڑوی ‪-3‬‬
‫‪ : A/c # 010-1344-9‬اکاؤپت تمیر‬
‫‪ : ( UBL ) 0699‬پرا تخ کود تمیر‬
‫) بہ ننیون اکاؤپت بوناننید ننیک لمنید ‪ ،‬کراحی کی کیانی سہیدڑود پرا تخ منن ہنن ۔ (‬
‫ُ‬
‫گل ڑاڑ جنیت پرست‬
‫ل‬
‫دولی کھانا ‪ ،‬گلسیان اوکاڑوی ( سو جر ناڑاڑ ) کراحی‬
‫قون ‪2352 5223 ) 820 ( :‬‬
‫خوس جیری‬
‫م مس ہ س ّٰ حط ع‬
‫م ل لم‬
‫ظ‬
‫ک‬
‫م‬
‫ح‬
‫س‬
‫ض‬
‫مولانا اوکاڑوی اکاد ی (ا عا ی ) تے جدد لک ا ل نت ‪ ،‬یت ا م نا یان رت ولانا‬
‫عل‬
‫م‬
‫م‬
‫م ق‬
‫ع‬
‫پ‬
‫س‬
‫ص‬
‫ح‬
‫ج‬
‫ی‬
‫ق‬
‫س‬
‫ی‬
‫حمد س یع اوکاڑوی علتہ الرحمہ والرضوان کے ی ر ‪ ،‬ق ڑ ول (ﷺ) اوڑ قابہ ب رت کی‬
‫م‬
‫اننتہ داڑ بقاڑپر کو حقوط کر تے اوڑ تھیلا تے کے لئے انک سعتہ قاتم کیا ُہوا ہے ‪ ،‬ات نک بقرپیا نا تخ سو‬

‫م‬
‫اہم موضوعات پر میعدد بقاڑپر حقوط کرلی گیی ہنن ۔ اڑادہ ہے کہ ان ست بقاڑپر کو کیابون منن‬
‫م‬
‫) حقوط کیا جا تے ( ان ساء ال ّٰلہ بعالی‬
‫ھ‬
‫ات ان بقاڑپر کی سماعت سے انداڑہ کرسکنن گے کہ احقاق خق اوڑ ابطال ناطل کے لئے اج ت ی‬
‫بہ بقرپرپن ننش تہا سرمابہ ہنن ۔‬

‫ھ‬
‫کس ھ‬
‫کس‬
‫علاوہ اڑپن دس موضوعات پر ودبو ن ینن ت ی دست نات ہنن ۔ بقاڑپر کی بہ ن ینن خود ت ی‬
‫ک‬
‫ک‬
‫ھ‬
‫جاصل یحئے اوڑ ا پئے احیات کو ت ی ننش یحئے ‪ ،‬نلاستہ بہ گران قدڑ تحفہ ہنن ۔‬
‫م ل لم‬
‫ل‬
‫ی‬
‫پ‬
‫س‬
‫) مولانا اوکاڑوی اکاد ی ا عا ی ( ڑبکاڑدنگ و یگ دوڑن‬

‫ھ م‬
‫۔ نی ‪ ،‬سید ی سلم سوساپیی ‪ ،‬کراحی ۔ قون ‪530525 5432 :‬‬
‫اپیل‬
‫ع‬
‫م ق‬
‫‪۲۸۹۵‬ء منن مجدد مسلک اہل س ّٰنت ‪ ،‬حطیت ا ظم ناکسیان ‪ ،‬حضرت مولانا حمد س یع اوکاڑوی علتہ‬
‫ل‬
‫الرحمہ والرضوان تے دولی کھانا ‪ ،‬گلسیان اوکاڑوی ( سو جر ناڑاڑ ) کراحی منن ‪0088‬ء سے مسجد کے‬
‫ُ‬
‫ُ‬
‫لئے وقف قطعہ اڑاصی پر گل ڑاڑ جنیت ( ﷺ ) پرست قاتم کر کے جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫ُ‬
‫(ﷺ ) کی اڑ سر بو ب میر کا اعاڑ کیا تھا ۔ ‪۲۸۹۴‬ء منن گل ڑاڑ جنیت ( ﷺ ) پرست ی کے تحت‬
‫ُ‬
‫جامعہ اسلامتہ گل ڑاڑ جنیت ( ﷺ ) کا اعاڑ ُہوا ۔‬

‫نک‬
‫م‬
‫ع‬
‫مسل‬
‫م‬
‫ی‬
‫ک‬
‫ل‬
‫ئ‬
‫تحمدہ بعالی حوڑہ بقسے کے مطابق ب میری کام سل جاڑی ہے ۔ ان اداڑون کی ل ے ے ات‬
‫خود بعاون فرماننن اوڑ ا پئے جلفہ اپر منن احیات کو پرعیت دپن ۔ ال ّٰلہ بعالی ات کو خرا تے جیر‬
‫ع‬
‫ہ‬
‫ُ‬
‫عطا فرما تے ۔ مسجد گل ڑاڑ جنیت ( ﷺ ) ی کے اجا ظے منن حضرت حطیت ا ظم کا مراڑ‬
‫ھ ع‬
‫میاڑک ت ی ب میر ہوڑہا ہے ۔‬
‫ُ‬
‫گل ڑاڑ جنیت ( ﷺ ) پرست‬
‫ل‬
‫گلسیان اوکاڑوی ( سو جر ناڑاڑ ) کراحی ۔ قون ‪2352 5223 )820( :‬‬
‫ُ‬
‫) اکاؤپت تمیر جامع مسجد گل ڑاڑ جنیت ‪(0-2824-808‬‬
‫ُ‬
‫جامعہ اسلامتہ ‪ ،‬گل ڑاڑ جنیت ‪ ) 3-2200-808‬بوناننید ننیک لمنید‪ ،‬کیانی سہید ڑود پرا تخ (‬
‫کراحی‬