You are on page 1of 248

‫کتاب الرسالۃ‬

‫امام محمد بن ادریس شافعی رحمۃ اللہ‬


‫علیہ‬

‫ترجمہ‪ ،‬تلخیص اور حواشی‪ :‬محمد مبشر نذیر‬

‫‪December 2007‬‬
‫فہرست‬
‫‪......................................................................................................................................................3‬دیباچہ‬
‫‪........................................................................................................................................5‬مقدمہ )از مترجم(‬
‫‪...................................................................................................................................5‬اصول فقہ کیا ہے؟‬
‫‪..............................................................................................................................6‬اصول فقہ کا موضوع‬
‫‪..............................................................................................................6‬اصول فقہ کے فن کا تاریخی ارتقاء‬
‫‪.....................................................................................................................................21‬حصہ اول‪ :‬تعارف‬
‫‪.........................................................................................................................................22‬باب ‪ :1‬تعارف‬
‫‪...........................................................................................................................................30‬باب ‪ :2‬البیان‬
‫‪.........................................................................32‬بیان ‪ :1‬ایسےاحکام جنہیں قرآن ہی میں مزید واضح کر دیا گیا‬
‫‪..............................................................................33‬بیان ‪ :2‬ایسے احکام جنہیں واضح کرنے کی ضرورت نہیں‬
‫‪........................................................................35‬بیان ‪ :3‬ایسے احکام جن کی وضاحت سنت کے ذریعے کی گئی‬
‫‪.............................................................................................................35‬بیان ‪ :4‬سنت میں بیان کردہ احکام‬
‫‪.............................................................................................................................36‬بیان ‪ :5‬اجتہادی امور‬
‫‪........................................................................................................................40‬باب ‪ :3‬اسلمی قانون کا علم‬
‫‪...................................................................................................................................45‬حصہ دوم‪ :‬کتاب اللہ‬
‫‪................................................................................................................................46‬باب ‪ :4‬قرآن کی زبان‬
‫‪...............................................................................................................................51‬باب ‪ :5‬خاص اور عام‬
‫‪........................................52‬کتاب اللہ کی بظاہر عام آیت جو عمومی نوعیت ہی کی ہے اور خاص اسی میں داخل ہے‬
‫‪.........................................................................53‬بظاہر عام آیت جس میں عام اور خاص دونوں شامل ہوتے ہیں‬
‫‪...................................................................54‬بظاہر عام آیت جس سے مراد صرف اور صرف خاص ہی ہوتا ہے‬
‫‪..........................................................56‬ایسے احکام جن کے خاص و عام کی وضاحت سیاق و سباق سے ہوتی ہے‬
‫‪...............................56‬ہوتے ہیں اور انہیں الفاظ میں بیان نہیں کیا جاتا )‪ (Implied‬ایسے احکام جو بین السطور پوشیدہ‬
‫‪........................................................57‬ایسے بظاہر عام احکام جن کی وضاحت سنت سے ہوتی ہے کہ وہ خاص ہیں‬
‫‪..................................................................................................................62‬باب ‪ :6‬ناسخ و منسوخ احکامات‬
‫‪.............................65‬ایسے ناسخ و منسوخ جن کے بارے میں کتاب اللہ سے بعض اور حدیث سے بعض احکام ملتے ہیں‬
‫‪..............................................................................................................................67‬نسخ کی دیگر مثالیں‬
‫‪............................................................................74‬ناسخ و منسوخ آیات جن کا علم سنت اور اجماع سے ہوتا ہے‬
‫‪................................................77‬ایسے فرائض جن کے لئے قرآن میں نص موجود ہے کے ناسخ و منسوخ کی مثالیں‬
‫‪..................................................................82‬ایسے قرآنی احکام جن کے ساتھ رسول اللہ کی سنت بھی موجود ہے‬
‫‪...............84‬ایسے قرآنی احکام جن کے بارے میں سنت میں وضاحت کی گئی کہ ان کا حکم خاص صورتحال کے لئے ہے‬
‫‪.......................................................................................................................................98‬حصہ سوم‪ :‬سنت‬
‫‪.....................................103‬باب ‪ :7‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے احکامات کی حجیت قبول کرنے کی ذمہ داری‬
‫‪.....................................................................................113‬باب ‪ :8‬اللہ اور اس کے رسول کی بیان کردہ ممانعتیں‬
‫‪.....................................................................................................................................118‬باب ‪ :9‬روایات‬
‫‪....................................................................................................................118‬روایت میں موجود خامیاں‬
‫‪....................................................................................................129‬ناسخ و منسوخ روایات کی دیگر مثالیں‬
‫‪...................................................................................................................................134‬متضاد روایات‬
‫‪.................................................................................................................................161‬باب ‪ :10‬خبر واحد‬
‫‪.....................................................................................................170‬خبر واحد کے ثبوت کے حق میں دلئل‬
‫‪........................................................................................194‬حصہ چہارم‪ :‬اجماع‪ ،‬قیاس‪ ،‬اجتہاد اور اختلف رائے‬
‫‪....................................................................................................................197‬باب ‪ :11‬اجماع )اتفاق رائے(‬
‫‪......................................................................................................................................199‬باب ‪ :12‬قیاس‬
‫‪.....................................................................................................................................205‬باب ‪ :13‬اجتہاد‬
‫‪..........................................................................................................................................211‬استحسان‬
‫‪...................................................................................................................212‬اجتہاد و قیاس کا طریق کار‬
‫‪............................................................................................................................233‬باب ‪ :14‬اختلف رائے‬
‫‪.....................................................................................................245‬صحابہ کرام کے مختلف نقطہ ہائے نظر‬
‫‪........................................................................................................................245‬اجماع اور قیاس کا مقام‬

‫‪2‬‬
‫دیباچ ہ‬
‫زیر نظر کتاب امام شافعی علیہ الرحمۃ کی تصنیف ہے۔ یہ "اصول فققہ" )‪Principles of‬‬
‫‪ (Islamic Jursiprudence‬کے فن میں پہلی تصنیف ہے۔ امام صاحب نے یہ کتاب اپنے دور‬
‫کے ایک گورنر اور عالم عبدالرح ٰمن بن مہدی کی فرمائش پر اس کے لئے لک ھی۔ اس‬
‫کتاب میں انہوں نے نہ صرف اصول بیان کیے ہیں بلکہ ان اصولوں کی وضاحت کققے لئے‬
‫بہت سے مثالیں بھی بیان کی ہیں۔ کتاب کا اسلوب زیادہ تر مکالمے کی شکل میں ہے‬
‫جس میں امام شافعی نے مختلف حضرات کے ساتھ اپنا مکالمہ نقل کیا ہے۔‬
‫اس کتاب کا ترجمہ و تلخیص کرنے کا مقصد یہ ہے کقہ جدیققد تعلیققم یققافتہ طبققے کققو‬
‫اسلمی علوم سے آگاہ کیا جائے۔ امت مسلمہ کقے جدیقد تعلیقم یقافتہ طبققے اور ہمققارے‬
‫قدیم دینی علوم میں ایک بہت بڑی خلیج پیدا ہو چکی ہے جس کقے بققاعث ایققک طققرف‬
‫ہمارا دینی طبقہ جدید تعلیم یافتہ طبقے کقے طققرز فکققر سقے نققا آشققنا ہہہے اور دوسققری‬
‫طرف جدید طبقہ علوم دینیہ کو پرانے زمانے کی چیز سمجھتا ہے۔ چونکہ جدید طبقہ ہی‬
‫ہمارے معاشروں کی حقیقی قیادت کے منصب پر فائز ہے اس وجقہ سقے معاشققرہ عمل ً‬
‫دین اور دینی علوم سے دور ہوتا جا رہا ہے۔‬
‫میری عرصہ دراز سے یہ خواہش تھی کہ جدید تعلیم یققافتہ طبققے کققو اسققلمی علققوم‬
‫سے روشناس کروایا جائے۔ اسلمی علوم کی معرکۃ الرا تصانیف کققو ان ہی کققی زبققان‬
‫اور اسلوب میں پیش کیا جائے تاکہ جدید اور قدیم کے مابین اس خلیج کو پر کرنے کی‬
‫کوشش کی جا سکے۔ جدید تعلیم یافتہ افراد کو یہ بتانے کققی ضققرورت ہے کقہ اسققلمی‬
‫علوم محض دیو مالئی داستانیں نہیں ہیں بلکہ یہ اعلی درجقے کقی کاوشقوں کقے نتقائج‬
‫ہیں جن کے پیچھے امت مسلمہ کے ذہین ترین افراد کی علمی و عقلی کاوشیں موجود‬
‫ہیں۔‬
‫اس کتاب کو آپ کی خدمت میں پیش کرنے کے لئے میققں اپنقے اسققتاذ محمققد عزیققر‬
‫شمس کا شکر گزار ہوں جن سے اس کتاب کے مندرجات کے بارے میں میں نے متعدد‬
‫نشستوں میں مکالمہ کیا اور ان کی راہنمائی حاصل کی۔ اس کتاب کو ای قڈٹ کققر ک قے‬
‫دنیا کے سامنے پیش کرنے والے مصری عالم شیخ احمد محمد شققاکر صققاحب کققا ب ھی‬
‫میں شکر گزار ہوں جن کے ایڈٹ کردہ نسخے کی بنیاد پر ی قہ ترجم قہ ہو سققکا۔ عراقققی‬
‫عالم ماجد خدوری صاحب بھی شکریے کے مستحق ہیں جن کے انگریزی ترجم قے س قے‬
‫اس کتاب کو سمجھنے میں مجھے بہت مدد ملی۔ اہل علم سقے میقری گقزارش ہے کقہ‬
‫اگر انہیں ترجمے و تلخیص میں کوئی غلطی نظر آئے تو مطلع فرما کر عند اللہ ماجور‬
‫ہوں۔‬
‫اس کتاب کو جدید سانچے میں ڈھالنے کے لئے یہ اقدامات کیے گئے ہیں‪:‬‬
‫• کتاب کے مندرجات کو قدیم علوم کی پیچیدہ زبان کی بجائے عام بول چال کی‬
‫آسان اردو میں منتقل کیا گیا ہے۔‬
‫• اصول حدیث‪ ،‬اصول فقہ اور فقہ کی پیچیدہ اصطلحوں کی جگہ عام فہم زبققان‬
‫استعمال کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ جہاں اصطلحات کا استعمال ضققروری‬
‫تھا‪ ،‬وہاں ان کی وضاحت نوٹس کے ذریعے کی گئی ہے۔‬
‫• بہت سے مقامات پر کتاب کے مندرجات کو سمجھنے ک قے لئے وضققاحتی نققوٹس‬
‫کی ضرورت محسوس ہوئی جو فراہم کر دیے گئے ہیں۔‬

‫‪3‬‬
‫• امام شافعی کے دور میں کتاب ک قے عنوانققات اور ذیلققی عنوانققات کققو مناسققب‬
‫فارمیٹنگ کے ذریعے علیحدہ کرنے کا رواج نہ تھا جس کی وجہ سے کتاب کے نظم‬
‫)‪ (Organization‬کو سمجھنے میں دقت پیش آتی تھی۔ ماجد خدوری صققاحب ن قے‬
‫انگریزی ترجمے میں کتاب کو منظم کرنے کی جو کوشش کی ت ھی اس قے میققں‬
‫نے اردو ترجمے میں آگے بڑھاتے ہوئے چند مزید عنوانات قائم کیے ہیں اور کتققاب‬
‫کے ابواب کی ترتیب کو بہتر بنانے کی کوشش کی ہے۔‬
‫• اصول فقہ کے فن کے تعققارف‪ ،‬ارتقققاء اور تاریققخ س قے متعلققق ایققک مقققدمہ اس‬
‫کتاب کے شروع میں شامل کر دیا گیا ہے۔‬
‫• یہ کتاب بنیادی طور پر اصول فقہ کی ہے لیکققن ان اصققولوں کققی مثققالیں پیققش‬
‫کرنے کی وجہ سے کتاب خاصی طویل ہو گئی ہے۔ میں نے کتاب کے ہر حصے کے‬
‫آغاز میں تفصیلی مثالوں سے اجتناب کرتے ہوئے صرف اور صققرف اصققولوں کققا‬
‫خلصہ پیش کرنے کی کوشش کی ہے۔ ان اصولوں کا خلص قہ مقققدمے میققں ب ھی‬
‫پیش کر دیا گیا ہے۔‬
‫یہ کوشش کس حد تک کامیاب ہے‪ ،‬اس کا اندازہ آپ کے تاثرات سے ہو گا۔ اگر آپ کققو‬
‫اس کتاب میں کوئی خوبی نظر آئے تو یقہ صقرف اور صقرف اللقہ تعقالی کقے کقرم اور‬
‫میرے اساتذہ کی محنت ہے اور اگر کوئی غلطی نظر آئے تو اسے میری کققم علمققی اور‬
‫کم فہمی پر محمول کیجیے۔‬

‫محمد مبشر نذیر‬


‫‪December 2007‬‬

‫‪4‬‬
‫مقدم ہ )از مترجم(‬
‫اصول فق ہ کیا ہے؟‬
‫اس بات پر پوری امت مسلمہ کا اتفاق ہے کہ ختم نبوت کے بعد اب دین کققا تن ہا ماخققذ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات وال صفات ہے۔ حضققور نققبی اکققرم صققلی الل قہ‬
‫وسلمے ہمیں دین دو طریقوں سے عطا فرمایا ہے‪ :‬ایک اللہ تعال ٰی کا براہ راسققت‬ ‫ن‬ ‫علیہ‬
‫کلم جو قرآن مجید ہے اور دوسری حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت مبارکہ۔‬
‫جب کوئی معاشرہ مذہب کو اپنے قانون کا ماخذ بنا لیتا ہے تققو اس کقے نققتیجے میقں‬
‫علم فقہ وجود پذیر ہوتا ہے۔ علم فقہ‪ ،‬دین کے بنیادی ماخذوں سے حاصل شققدہ قققوانین‬
‫کے ذخیرے کا نام ہے۔ چونکہ دین اسلم میں قانون کا ماخذ قرآن مجید اور رسول اللققہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت ہے اس وجہ سے تمققام قققوانین ان ہی س قے اخققذ کی قے‬
‫جاتے ہیں۔ جب قرآن و سنت کی بنیاد پر قانون سازی کا عمل شروع کیا جائے تو اس‬
‫کے نتیجے میں متعدد سوالت پیدا ہو جاتے ہیں‪:‬‬
‫• قرآن مجید کو کیسے سمجھا جائے؟‬
‫• قرآن مجید کو سمجھنے کے لئے کس کس چیز کی ضرورت ہے؟‬
‫• سنت کو سمجھنے کے لئے کس کس چیز کی ضرورت ہے؟‬
‫• سنت کہاں سے اخذ کی جائے گی؟‬
‫• قرآن اور سنت کا باہمی تعلق کیا ہے؟‬
‫• قرآن مجید‪ ،‬سنت اور حدیث میں سے کس ماخذ کو دین کققا بنیققادی اور کققس‬
‫ماخذ کو ثانوی ماخذ قرار دیا جائے؟‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے مروی احادیث کو کیسے سمجھا جققائے‬
‫گا اور ان سے سنت کو کیسے اخذ کیا جائے گا؟‬
‫• اگر قرآن مجید کی کسی آیت اور کسی حدیث میں بظاہر کوئی اختلف نظققر‬
‫آئے یا دو احادیث میں ایک دوسرے سقے بظقاہر اختلف نظقر آئے تقو اس اختلف‬
‫کو دور کرنے کے لئے کیا طریقہ اختیار کیا جائے گا؟‬
‫ان سوالوں کا جواب دینے کے لئے جو فن وجود پذیر ہوتا ہے‪ ،‬اسے اصول فق قہ ک ہا جاتققا‬
‫ہے۔ اصول فقہ کی تعریف ان الفاظ میں کی گئی ہے‪:‬‬
‫اصول الفقة کلمة مرکبققة مقن کلمققتين‪ ،‬يقصققد منهقا مجموعققة القواعققد و‬
‫القوانين الکلية الققتی ينبنققی عليهققا اسققتنباط الحکققام الفقهيققة مققن الدلققة‬
‫الشققرعية۔ و هههو بهققذا المفهققوم يعتققبر قققانون الفکققر السققلمی‪ ،‬و معيققار‬
‫الستنباط الصحيح۔ )الققدکتور عبققدالوہاب ابراہیققم ابققو سققلیمان‪ ،‬الفکققر الصققولی‪:‬‬
‫دراسۃ تحلیلیۃ نقدیۃ۔ ص ‪ ۱۸‬مطبع دارالشروق‪ ،‬جدہ(‬
‫"اصول فقہ" دو الفاظ سے مقل کقر بنقا ہے۔ اس کقا مطلقب ہے ققوانین اور قواعقد و‬
‫ضوابط کا مجموعہ جس کی بنیاد پر شرعی دلئل سے قانونی احکام اخققذ کی قے جققاتے‬
‫ہیں۔ اس مفہوم میں اس کا مطلب "فکر اسلمی کا قققانون" ہہہے اور یہہہی احکققام کققو‬
‫صحیح طور پر اخذ کرنے کا معیار ہے۔‬
‫ایک اور صاحب علم لکھتے ہیں‪:‬‬

‫‪The science of Source Methodology in Islamic Jurisprudence Usul al Fiqh has been‬‬
‫‪defined as the aggregate, considered per se, of legal proofs and evidence that, when‬‬
‫‪studied properly, will lead either to certain knowledge of a Shari'ah ruling or to at‬‬

‫‪5‬‬
‫‪least a reasonable assumption concerning the same; the manner by which such‬‬
‫ڈاکٹر طہ جابر العلوانی‪ ،‬اصول الفقہ ( ‪proofs are adduced, and the status of the adducer.‬‬
‫)السلمی‪ ،‬باب ‪1‬‬

‫اصول فقہ یعنی اسلمی فقہ کے ماخذوں سے قوانین اخذ کرنے ک قے علققم کققی تعریققف‬
‫اس طرح کی جا سکتی ہے کہ یہ قانون کے ثبوت کے حصول کا ایسا مجموعہ ہے جققس‬
‫کا اگر صحیح طور پر مطالعہ کی جائے تو اس کی بنیاد پر شریعت کے کسی حکم کققا‬
‫واضح طور پر تعین کیا جا سکتا ہے یا کم از کم ایک قابل قبول حققد تققک شقریعت کقے‬
‫کسی حکم کے بارے میں رائے قائم کی جا سکتی ہے۔ یہ اس طریقے کقا نقام ہے جقس‬
‫کی بنیاد پر یہ ثبوت اکٹھا کیا جاتا ہے اور اسی سے ثبوت اکٹھا کرنے وال قے کققی حیققثیت‬
‫کا تعین کیا جاتا ہے۔‬

‫اصول فق ہ کا موضوع‬
‫اصول فقہ کے یہ اصول عقققل عققام کققی روشققنی میققں اخققذ کیقے گئے ہیققں۔ اصققول فققہ‬
‫کےبعض اصولوں کا ماخذ "اصول حدیث" کا فن ہے جس کے اصول بھی عقل عام کی‬
‫روشنی میں اخذ کیے گئے ہیں۔ ان اصولوں کا تعلق بالخصوص حققدیث سقے ہے۔ اسققی‬
‫طرح قرآن مجید سے متعلق اصول‪" ،‬اصول تفسیر" کے فن سے اخذ کی قے جققاتے ہیققں۔‬
‫اصول فقہ کا موضوع میں عام طور پر ان موضوعات کا مطالعہ کیا جاتا ہے‪:‬‬
‫• قرآن مجید کو سمجھنے کے اصول‬
‫• زبان و بیان کے اصول‬
‫• حلل و حرام سے متعلق احکام معلوم کرنے کا طریق کار‬
‫• دین کے عمومی اور خصوصی نوعیت کے احکامات کے تعین کا طریق کار‬
‫• دین کے ناسخ و منسوخ احکامات ک قے تعیققن کققا طریققق کققار )ی قہ تمققام مبققاحث‬
‫بنیادی طور پر اصول تفسیر کے فن کا حص قہ ہیققں لیکققن ان ک قے بنیققادی مبققاحث‬
‫اصول فقہ میں بھی بیان کیے جاتے ہیں۔(‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققی سققنت اور حققدیث کققو سققمجھنے کققا‬
‫طریق کار‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے روایت کردہ احادیث کو پرکھنے اور ان‬
‫کی چھان بین کرنے کا طریق کار )یہ بالعموم علم اصول حدیث کققا موضققوع ہے‬
‫لیکن اس کے بنیادی مباحث اصول فقہ میں بھی بیان کیے جاتے ہیں۔(‬
‫• اجماع )امت کے اتفاق رائے( کے ذریعے بنائے گئے قوانین کی حیثیت‬
‫• قیاس و اجتہاد کا طریق کار‬
‫• اختلف رائے سے متعلق اصول‬

‫اصول فق ہ ک ے فن کا تاریخی ارتقاء‬


‫عہد رسالت و صحابہ کرام کا دور اول)‪(60H-0‬‬
‫چونکہ اصول فقہ کے علم کا انحصار بنیادی طور پر علم فققہ ہی پقر ہے اس وجقہ سقے‬
‫اصول فقہ کا ارتقاء‪ ،‬فقہ کے ارتقاء کے ساتھ ساتھ ہی ہوا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ‬
‫وسلم اللہ تعالی کی وحی کی بنیاد پر دینی احکام جاری فرماتے۔ کبھی ایسا بھی ہوتققا‬
‫کہ وحی سے کوئی حکم نہ ملنے کی صورت میں آپ اجتہاد فرماتے۔ بعد میں اللہ تعالی‬
‫کی جانب سے بذریعہ وحی اس اجتہاد کی توثیق کر دی جاتی یا اگر کسی تغیر و تبدل‬

‫‪6‬‬
‫کی ضرورت پیش آتی تو اس بارے میں آپ کو وحی کے ذریعے رہنمائی فرا ہم کققر دی‬
‫جاتی۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے تربیت یافتہ اصحاب میں بہت سے ایسے ت ھے‬
‫جو آپ کی حیات طیبہ ہی میں فتوی )دینی معاملت میں ماہرانہ رائے( دینا شققروع کققر‬
‫چکے تھے۔ ظاہر ہے ایسا حضور کی اجازت کے ساتھ ہی ہوا تھا۔ ان صققحابہ میققں سققیدنا‬
‫ابوبکر‪ ،‬عمر‪ ،‬عثمان‪ ،‬علی‪ ،‬عائشہ‪ ،‬عبدالرح ٰمن بن عوف‪ ،‬عبداللہ بن مسعود‪ ،‬ابققی بققن‬
‫کعب‪ ،‬معاذ بن جبل‪ ،‬زید بن ثابت اور ابو موسی اشعری رضققی الل قہ عن ہم ک قے فتققاوی‬
‫مشہور ہیں۔ ان کے فتوی دینے کا طریق کار یہ تھا کہ جب ان کے سامنے کققوئی صققورت‬
‫حال پیش کی جاتی تو وہ اس کا موازنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے سامنے‬
‫پیش آ جانے والی صورتحال سے کرتے اور ان میں مشققابہت کققی بنیققاد پققر حضققور کقے‬
‫فیصلے کی بنیاد پر اپنا فیصلہ سنا دیتے۔‬
‫خلفت راشدہ کے دور میں بھی یہی طریق کار جاری رہا۔ سیدنا ابوبکر صدیق رضی‬
‫اللہ عنہ کے بارے میں حضرت میمون بن مہران رضی اللہ عنہ کہتے ہیں ک قہ جققب آپ ک قے‬
‫پاس کوئی مقدمہ لیا جاتا تو سب سے پہلے آپ قرآن میں دیکھتے۔ اگر اس صققورتحال‬
‫سے متعلق کوئی حکم آپ کو ملتا تو آپ اس کے مطابق فیصققلہ کققر دیتقے۔ اگققر قققرآن‬
‫سے کوئی واضح حکم نہ ملتا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے سابق فیصلوں‬
‫کی طرف رجوع فرماتے۔ اگر اس میں بھی کوئی بات نہ ملتی تو صحابہ کقے ا ہل علققم‬
‫کو جمع کر کے ان کی رائے لیتے اور ان کے اتفاق رائے )اجماع( کی بنیاد پر فیصققلہ کققر‬
‫دیتے۔ اگر صحابہ کے اہل علم میں کسی معاملے میں اتفاق رائے نہ ہو پاتققا تققو پ ھر آپ‬
‫اپنے اجتہاد سے فیصلہ کر دیتے۔) شاہ ولی اللہ‪ ،‬حج قۃ الل قہ البققالغہ‪ ،‬بققاب ‪ (84‬عہد صققدیقی کققی‬
‫بڑی خصوصیت یہ تھی کہ اس دور میں قققانون سققازی اجمققاع اور قیققاس کققا اسققتعمال‬
‫کافی بڑے پیمانے پر کیا گیا۔‬
‫سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے دور میں بھی یہی طریقہ کار اختیار کیا گیا۔ آپ کے دور‬
‫کی خصوصیت یہ ہے کہ آپ نے ہر اہم مسئلے میں غور و فکر کرنے کے لئے مجتہد صحابہ‬
‫کی ایک غیر رسمی کمیٹی بنائی جققس میققں اجتمققاعی طققور پققر غققور و فکققر کققر کقے‬
‫مسائل کو حل کرنے کی کوشش کی جاتی۔ اس کمیققٹی کقے اکققثر فیصققلے اجمقاع کقے‬
‫ذریعے طے پاتے۔ سیدنا عثمان اور علی رضی اللہ عنہما کے دور میققں ب ھی ی ہی طریققق‬
‫کار رائج رہا۔ یہ دونوں حضرات سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے دور میں مشاورتی کمیٹی‬
‫کے اہم ترین رکن تھے۔ اپنے دور خلفت میں انہوں نے بھی اسی طریققق کققار پققر عمققل‬
‫کیا۔ فقہ سیدنا علی رضی اللہ عنہ کا خاص میدان ت ھا۔ آپ ن قے عققدالتی معققاملت میققں‬
‫بہت سے فیصلے جاری فرمائے جن کی بنیاد پر آپ کے فتاوی کی ایک ضخیم کتاب تیار‬
‫کی جا سکتی ہے۔‬
‫حکومت سے ہٹ کر انفرادی طور پر بھی ب ہت سقے صققحابہ کققرام رضققی اللقہ عن ہم‬
‫لوگوں کی تعلیم و تربیت کے ساتھ ساتھ انہیں فقہی اور قانونی معققاملت میققں فتققاوی‬
‫جاری کیا کرتے تھے۔ یہ فتاوی اگرچہ قانون نہ تھے لیکن لوگ ان صحابہ پر اعتمققاد کرت قے‬
‫ہوئے ان کے اجتہادات کی پیروی کرتے۔ سیدنا عمر اور عثمان رضی اللقہ عنہ ہم کقے دور‬
‫میں بہت سے صحابہ مفتوحہ ممالک میں پھیل گئے اور مقامی آبادی کو دین کی تعلیققم‬
‫دینے لگے۔ یہ حضرات لوگوں کے سوالت کا قرآن و سنت کی روشنی میں جواب دیتے‬
‫اور فتاوی جاری کرتے۔ اس دور پر تبصرہ کرتے ہوئے شاہ ولی اللہ دہلوی لکھتے ہیں‪:‬‬
‫فرای کل صحابی ما یسرہ اللہ لہ من عبادتہ و فتاواہ و اقضققیتہ‪ ،‬فحفظققا و عقل و عققرف‬
‫لکل شییء وجھا من قبل حفوف القرائن بہ فحمل بعضھا علی البققاحہ و بعض قھا علققی‬

‫‪7‬‬
‫النسققخ‪ ،‬لمققارات و قققرائن کققانت کققافیۃ عنققدہ‪ ،‬و لققم یکققن العمققدۃ عنققدھم ال وجققدان‬
‫الطمئنان و الثلج من غیر التفات الی طرق السققتدلل‪ ،‬کمققا تققری العققراب یفھمققون‬
‫مقصود الکلم فیما بینھم و تثلققج صققدروھم بالتصققریح و التلویققح و البمققا مققن حیققث ل‬
‫یشعرون۔‬
‫و انقضی عصرہ الکریم و ھم علی ذلک‪ ،‬ثم انھم تفرقوا فققی البلد‪ ،‬و صققار کققل واحققد‬
‫مقتدی ناحیۃ من النواحی‪ ،‬فکثرت الوقائع و دارت المسققائل‪ ،‬فاسققتفتوا فی ھا‪ ،‬فاجققاب‬
‫کل واحد حسبما حفظقہ او اسققتنبط‪ ،‬و ان لققم یجققد فیمققا حفظقہ او اسققتنبط مققا یصققلح‬
‫للجواب اجتھد برایہ‪ ،‬و عرف العلۃ التی ادار رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ وسققلم علی ھا‬
‫الحکم فی منصوصاتہ‪ ،‬فطرد الحکم حیثما و جدھا ل یالو جھدا فی مققوافقۃ غرضقہ علیقہ‬
‫الصلوۃ والسلم۔ )شاہ ولی اللہ‪ ،‬حجۃ اللہ البالغہ‪ ،‬باب ‪(82‬‬
‫ہر صحابی نے اپنی سہولت کقے مطققابق رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققی‬
‫عبادت‪ ،‬فتاوی اور عدالتی فیصلوں کو دیکھا‪ ،‬سمجھا اور انہیں یاد کققر لیققا۔ ان ہوں ن قے‬
‫شواہد و قرائن کی بنیاد پر آپ کے ہر قول و فعل کی وجہ بھی معلوم کققر لققی۔ ان ہوں‬
‫نے بعض امور کے جائز اور بعض کے منسوخ ہونے کا تعین بھی کر لیققا۔ ان ک قے نزدیققک‬
‫قلبی اطمینان کی اہمیت )موجودہ دور کے( طریق استدلل سے زیادہ ت ھی۔ جیسققا ک قہ‬
‫آپ عرب دیہاتیوں کو دیکھتے ہیں کہ کہ وہ کلم عرب ک قے واضققح جملققوں اور اشققارات‬
‫سے بات کو سمجھ لیتے ہیں اور انہیں اس پر مکمل اطمینان بھی حاصل ہو جاتققا ہے‬
‫حالنکہ وہ یہ نہیں جانتے کہ یہ اطمینان کیسے حاصل ہوا ہے۔‬
‫اس کے بعد حضور کا مبارک دور گزر گیا اور صحابہ کرام مختلف ش قہروں میققں پھیققل‬
‫گئے۔ ان میں سے ہر صحابی اپنے شہر کے لوگوں کے لئے راہنما کی حیثیت اختیققار کققر‬
‫گیا۔ )چونکہ ملک بہت پھیل گیا تھا اس وجہ سے( کثیر تعداد میں واقعات پیش آنے لگے‬
‫اور لوگوں کو )دینی امور( دریافت کرنے کی ضققرورت محسققوس ہونے لگققی۔ صققحابہ‬
‫کرام اپنے حافظے اور استنباط کی بنیاد پر ان سوالوں کے جواب دیتقے اور اگققر انہیققں‬
‫اپنے محفوظ علم یا استنباط میں سے اس کا جواب نہ ملتا تو وہ اپنی رائے سے اجتہاد‬
‫کرتے۔ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے واضح احکام کققی وجو ہات )علتققوں(‬
‫کو جاننے کی کوشش کیا کرتے تھے۔ جہاں انہیں وہی وجہ )علت( نظققر آتققی‪ ،‬وہ حضققور‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے مقصد کے مطابق اس پر حکم لگا دیا کرتے تھے۔‬
‫صحابہ کرام کا دوسرا دور )‪(90H-60‬‬
‫جیسے جیسے وقت گزرتا گیا‪ ،‬بڑی عمر کے صحابہ جنہوں نے رسول اللہ صلی الل قہ علی قہ‬
‫و ٰالہ وسلم کے ارشادات‪ ،‬افعال اور فیصلوں کا براہ راسقت مشقاہدہ کیقا ت ھا‪ ،‬دنیقا سقے‬
‫رخصت ہوتے چلے گئے۔ اس وقت تک ان صحابہ کے تربیت یقافتہ صقحابہ اور تقابعین کقی‬
‫بڑی جماعت تیار ہو چکی تھی۔ یہ ان صحابہ کا دور تھا جو عہد رسالت میققں اب ھی کققم‬
‫عمر تھے۔ ان صحابہ میں سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما ایک خصوصی حیثیت‬
‫رکھتے تھے۔ آپ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم ک قے قریققبی صققحابہ جیس قے سققیدنا‬
‫عمر اور زید بن ثابت رضی اللہ عنہما کے شاگرد تھے۔ اس دور میں کچققھ سیاسققی اور‬
‫مذہبی فتنوں نے جنم لیا جس کے باعث دینی معاملت سے متعلققق ب ھی کچ قھ مسققائل‬
‫پیدا ہوئے۔ اس دور کی چیدہ چیدہ خصوصیات یہ ہیں‪:‬‬
‫• اہل علم کے ہاں قرآن اور حدیث میں غور و فکر کا سلسلہ جاری رہا۔‬
‫• احادیث کی نشر و اشاعت کا کام تیز ہوا۔ تابعین میں یہ شوق شدت اختیار کر‬
‫گیا کہ چونکہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زیققارت نہیققں کققر سققکے‪،‬‬
‫اس وجہ سے آپ کی باتوں کو ہم جس حد تک سن اور سمجھ سققکتے ہیققں‪ ،‬اس‬
‫کی کوشش کریں۔‬
‫• سیاسی اور مذہبی مسائل کے باعث احادیث وضع کرنے کا سلسققلہ شققروع ہوا‬

‫‪8‬‬
‫جس کی وجہ سے اہل علم کے ہاں یہ ضرورت محسوس کی گئی کہ احادیث کی‬
‫چھان بین ایک نہایت ہی ضروری کام ہے۔‬
‫• فقہاء صحابہ کے مختلف شہروں میں پھیل جانے کے باعث اجماع عملی طور پر‬
‫ممکن نہ رہا۔ اب اجماع ایک شہر کے علماء کے درمیان تو ممکن تھا لیکن پققورے‬
‫عالم اسلم کی سطح پر ایسا کرنا ممکن نہ تھا۔‬
‫تابعین کا دور )‪(150H-90‬‬
‫پہلی صدی ہجری کے آخری عشرے )لگ بھگ ‪730‬ء( تک صحابہ کققرام رضقی اللقہ عن ہم‬
‫دنیا سے رخصت ہو چکے تھے۔ سیدنا سہل بن سعد الساعدی‪ ،‬انس بن مالک اور عققامر‬
‫بن واثلہ بن ابو عبداللہ رضی اللہ عنہم آخر میں وفات پانے والے صحابہ ہیققں۔ اب تققابعین‬
‫کا دور تھا۔ اس دور میں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے تربیت یافتہ افراد کققثرت سققے‬
‫موجود تھے۔ ان میں نافع مولی ابن عمر‪ ،‬عکرمہ مولی ابن عباس‪ ،‬مکہ ک قے عطققاء بققن‬
‫رباح‪ ،‬یمن کے طاؤس بن کیسان‪ ،‬یمامہ کے یحیی بن کقثیر‪ ،‬کقوفہ کقے ابراہیقم النخعقی‪،‬‬
‫بصرہ کے حسن بصری اور ابن سیرین‪ ،‬خراسان کے عطققاء الخراسققانی‪ ،‬اور مققدینہ کقے‬
‫سعید بن مسیب اور عمر بن عبدالعزیز )رحمھم اللہ( کے نققام زیققادہ مشقہور ہیققں۔ شققاہ‬
‫ولی اللہ لکھتے ہیں‪:‬‬
‫فاختلفت مذاہب اصحاب النبی صلی اللہ علیہ وسلم و اخذ عنھم التققابعون کققذلک‪ ،‬کققل‬
‫واحد ما تیسر لہ‪ ،‬فحفظ ما سمع من حدیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم و مذاھب‬
‫الصققحابہ و عقل ھا‪ ،‬و جمققع المختلققف علققی مققا تیسققر لقہ‪ ،‬و رجققح بعققض القققوال علققی‬
‫بعض ۔۔۔۔۔۔فعند ذلک صار لکل عالم من علماء التققابعین مققذھب علققی حیققالہ فانتصققب‬
‫فی کل بلد امام‪ ،‬مثل سعید بن المسیب و سالم بن عبداللہ بققن عمققر فققی المققدینۃ‪ ،‬و‬
‫بعدھما الزھری و القاضی یحیی بن سعید و ربیعۃ بن عبدالرح ٰمن فیھا‪ ،‬و عطاء بن ابی‬
‫رباح بمکۃ‪ ،‬و ابراھیم النخعی و الشعبی بالکوفۃ‪ ،‬و الحسن البصری بالبصرۃ‪ ،‬و طققاؤس‬
‫بن کیسان بالیمن‪ ،‬و مکحول بالشام‪ ،‬فاظما اللہ اکبققادا الققی علققومھم فرغبققوا فی ھا‪ ،‬و‬
‫اخذوا عنھم الحدیث و فتاوی الصحابۃ و اقاویلھم۔ )شاہ ولی اللہ‪ ،‬حجۃ اللہ البققالغہ‪ ،‬بققاب‬
‫‪(82‬‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے اصحاب کے نقطہ ہائے نظر میققں اختلف پیققدا ہو گیققا‬
‫اور تابعین نے حسب توفیق ان کے علوم کو ان سے اخذ کر لیا۔ انہوں ن قے رسققول الل قہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی احادیث اور صحابہ کرام کے نقطہ ہائے نظقر کقو سقنا اور‬
‫سمجھا۔ اس کے بعد انہوں نے اختلفی مسققائل کققو اکٹ ھا کیققا اور ان میققں سقے بعققض‬
‫نقطہ ہائے نظر کو ترجیح دی۔۔۔۔۔ اس طرح ہر تابعی نے اپنقے علقم کققی بنیققاد پقر ایققک‬
‫نقطہ نظر اختیار کر لیا اور ان میں سے ہر ایک کسی شہر کا امام )لیڈر( بن گیا۔ مثال‬
‫کے طور پر مدینہ میں سعید بن المسیب اور سالم بن عبداللہ بن عمر اور ان کے بعققد‬
‫زہری‪ ،‬قاضی یحیی بن سعید اور ربیعۃ بن عبدالرح ٰمن‪ ،‬مکہ میں عطاء بققن ابققی ربققاح‪،‬‬
‫کوفہ میں شعبی اور ابراہیم النخعی‪ ،‬بصرہ میں حسن بصری‪ ،‬یمققن میققں طققاؤس بققن‬
‫کیسان‪ ،‬شام میں مکحول۔ اللہ تعالی نے لوگوں کے دل میں علوم کا شوق پیدا کر دیا‬
‫تھا‪ ،‬اس وجہ سے لوگ ان اہل علم کققی طقرف راغققب ہو گئے اور ان سقے حققدیث اور‬
‫صحابہ کے نقطہ ہائے نظر اور آراء حاصل کرنے لگے۔‬
‫تابعین نے نہ صرف رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی احققادیث ک قے ریکققارڈ کققو‬
‫محفوظ کیا بلکہ اس کے سققاتھ سققاتھ ہر شققاگرد نقے اپنقے اسققتاذ صققحابی کقے عققدالتی‬
‫فیصلوں اور فقہی آراء کو محفوظ کرنے کا اہتمام بھی کیا۔ سیدنا عمر بققن عبققدالعزیز‬
‫رضی اللہ عنہ نے اپنقے دور حکققومت میققں رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کقے‬
‫فیصلوں اور احادیث کو محفوظ کرنے کا سرکاری حکم جاری کیققا اور فتققوی دینقے کققا‬
‫اختیار اہل علم تک ہی محدود کیا۔ آپ ابوبکر محمد بن عمرو بققن حققزم النصققاری کقے‬

‫‪9‬‬
‫نام اپنے خط میں لکھتے ہیں‪:‬‬
‫"رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی جو حدیث ب ھی آپ کققو ملقے‪ ،‬اسقے لکقھ کققر‬
‫مجھے بھیج دیجیے کیونکہ مجھے خطرہ ہے کہ اہل علم کے رخصت ہونے کے ساتھ ساتھ یہ‬
‫علم بھی ضائع نہ ہو جائے۔"‬
‫تبع تابعین کا دور )‪(225H-150‬‬
‫تابعین کا دور کم و بیش ‪ 150‬ہجری )تقریبا ً ‪780‬ء( کے آس پققاس ختققم ہوا۔ اپنقے دور‬
‫میں تابعین کے اہل علم اگلی نسل میں کثیر تعداد میققں عققالم تیققار کققر چکقے ت ھے۔ یقہ‬
‫حضرات تبع تابعین کہلتے ہیں۔ اس وقت تک اصول فقہ کے قواعد اور قوانین پر اگرچہ‬
‫مملکت اسلمیہ کے مختلف شہروں میں عمل کیا جا رہا تھا لیکن انہیققں باضققابطہ طققور‬
‫پر تحریر نہیں کیا گیا تھا۔‬
‫یہ دور فقہ کے مشہور ائمہ کا دور تھا۔ مملکققت اسققلمی اب بلوچسققتان سقے لقے کققر‬
‫مراکش تک پھیل چکی تھی۔ حکمران اپنے پیشروؤں کی طرح اس درجے ک قے اخلقققی‬
‫معیار پر نہ رہے تھے کہ ان سے دینققی معققاملت میققں راہنمققائی حاصققل کققی جققاتی۔ اس‬
‫وقت یہ ضرورت محسوس کی جقا ر ہی ت ھی کقہ اس عظیققم سقلطنت کقے لئے مقدون‬
‫قانون )‪ (Codified Law‬کا مجموعہ تیار کیا جائے۔ ہونا تو یہ چاہیے ت ھا ک قہ حکققومت کققی‬
‫طرف سے ایک باضابطہ ادارہ بنایا جاتا جس میں پوری امت کے اہل علم کقو اکٹ ھا کیقا‬
‫جاتا اور یہ سب حضرات مل کر قانون سازی کرتے لیکن ایسا کچقھ نقہ ہوا۔ اس وقققت‬
‫دنیا کی قانونی تاریخ کا عجیب و غریب واقعہ پیش آیا کہ مختلف شہروں میں اہل علم‬
‫نے قرآن و سنت اور صحابہ و تابعین کی فقہی آراء اور قانونی فیصققلوں کققی بنیققاد پققر‬
‫پرائیویٹ قانون ساز مجالس بنانا شروع کر دیں۔‬
‫اس دور میں نقل و حمققل اور ابلغ کقے ذرائع اتنقے ترقققی یققافتہ ن قہ ت ھے کقہ مختلققف‬
‫شہروں کے اہل علم ایک دوسرے سے تبادلہ خیال کرتے۔ اس وجہ سے ہر شہر کققے رہنققے‬
‫والوں نے اپنے شہر کے صحابہ و تابعین کے پھیلئے ہوئے علم‪ ،‬جس میں رسول اللہ صلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی احادیث اور صحابہ و تابعین کے فقہا ک قے اجت ہادات شققامل ت ھے‪،‬‬
‫کی پیروی شروع کر دی۔‬
‫اہل مدینہ میں امام مالک رحمۃ اللہ علیہ )وفات ‪179‬ھ( کا مکتب فکر وجققود پققذیر ہوا۔‬
‫انہوں نے مدینہ کے فقہاء صحابہ سیدنا عمر‪ ،‬ابن عمر‪ ،‬عائشہ‪ ،‬عبداللہ بن عباس اور زیققد‬
‫بن ثابت رضی اللہ عنہم اور فقہا تققابعین و تبقع تققابعین سققعید بققن مسققیب )وفققات ‪93‬ھ(‪،‬‬
‫عروہ بن زبیر )وفات ‪94‬ھ(‪ ،‬سالم )وفات ‪106‬ھ(‪ ،‬عطاء بن یسار )وفات ‪103‬ھ(‪ ،‬قاسققم بققن‬
‫محمد بن ابوبکر )وفات ‪103‬ھ(‪ ،‬عبیداللہ بن عبداللہ )وفات ‪99‬ھ(‪ ،‬ابن شہاب ز ہری )وفققات‬
‫‪124‬ھ(‪ ،‬یحیی بن سعد )وفات ‪143‬ھ(‪ ،‬زید بققن اسققلم )وفققات ‪136‬ھ(‪ ،‬ربیع قۃ الققرائے )وفققات‬
‫‪136‬ھ( رحمۃ اللہ علیہم کے اجتہادات کی بنیاد پر قانون سازی کا عمل شروع کیا۔‬
‫اسی دور میں بالکل یہی عمل کوفہ میں بھی جاری تھا۔ یہاں امام ابوحنیفہ رحمۃ اللہ‬
‫علیہ )وفات ‪150‬ھ( کا مکتب فکر بعینیہ یہی کام کر رہا تھا۔ انہوں نے کوفہ میں قیام پققذیر‬
‫ہو جانے والے فقہاء صحابہ سیدنا عبداللہ بن مسعود اور علی رضی الل قہ عنہمققا اور فقہہہا‬
‫تابعین جیسے قاضی شریح )وفات ‪77‬ھ(‪ ،‬شعبی )وفات ‪104‬ھ(‪ ،‬ابراہیم نخعی )وفققات ‪96‬ھ(‬
‫رحمۃ اللہ علیہم کے اجتہادات کی بنیاد پر قانون سازی کا عمل جاری رکھا۔‬
‫اس دور سے پہلے فن تحریر موجود تھا اور قرآن مجید کو باقاعدہ لکقھ کققر اس کققی‬
‫نشر و اشاعت کی جا چکی تھی لیکن احادیث کو لکھ کر پھیلنے کا سلسلہ عام ن قہ ہوا‬
‫تھا۔ جن لوگوں نے احادیث کو باقاعدہ لکھا تھا‪ ،‬اس کی حیثیت ب ھی شققائع شققدہ کتققاب‬

‫‪10‬‬
‫کی بجائے ذاتی ڈائری کی تھی۔ احادیث کو باقاعدہ مدون کر کے پھیلنے کا سلسلہ اس‬
‫دور میں شروع ہوا اور امام مالک کی موطاء اس دور کی کتاب ہے جو آج ب ھی پققوری‬
‫دنیا میں شائع ہو رہی ہے۔ ابن ابی ذئب )وفات ‪158‬ھ(‪ ،‬ابن جریج )وفات ‪150‬ھ(‪ ،‬ابن عینیہ‬
‫)وفات ‪196‬ھ(‪ ،‬سفیان ثوری )وفات ‪161‬ھ(‪ ،‬اور ربیع بن صبیح )وفققات ‪160‬ھ( کی کتققب کققا‬
‫سراغ بھی ملتا ہے۔‬
‫امام ابوحنیفہ ‪ ،‬جو کہ ابراہیم نخعی کے شاگرد حمققاد )وفققات ‪120‬ھ( اور امققام جعفققر‬
‫صادق )وفات ‪148‬ھ( رحمہم اللہ کے شاگرد تھے‪ ،‬کی تقریبقا ً چققالیس افققراد پققر مشققتمل‬
‫ایک ٹیم تھی جو قرآن و سنت کی بنیادوں پر قانون سازی کا کام کققر ر ہی ت ھی۔ اس‬
‫ٹیم میں ہر شعبے کے ماہرین شامل تھے جقن میقں زبقان‪ ،‬شقعر و ادب‪ ،‬لغققت‪ ،‬گرامقر‪،‬‬
‫حدیث‪ ،‬تجارت ‪ ،‬سیاست ‪ ،‬فلسققفے ہر علققم کقے مققاہرین نمایققاں ت ھے۔ ہر سققوال پققر‬
‫تفصیلی بحث ہوتی اور پھر نتائج کو مرتب کر لیا جاتا۔ امام صاحب نے خود تو فقہ اور‬
‫اصول فقہ پققر کققوئی کتققاب نہیققں لک ھی لیکققن ان کقے فیصققلوں کققو ان کقے شققاگردوں‬
‫بالخصوص امام ابو یوسف اور امام محمد بن حسن شیبانی علیہما الرحمقۃ نقے مققدون‬
‫کیا۔ امام ابوحنیفہ اور مالک کے علوہ دیگر اہل علم جیسے سفیان ثوری‪ ،‬اوزاعی‪ ،‬لیث‬
‫بن سعد علیہم الرحمۃ یہی کام کر رہے تھے لیکن ان کے فقہ کققو وہ فقروغ حاصققل نقہ ہو‬
‫سکا جو حنفی اور مالکی فقہ کو ہوا۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ت ھی کقہ ہارون رشققید کقے‬
‫دور میں حنفی فقہ کو مملکت اسلمی کا قانون بنا دیا گیا اور مققالکی فق قہ کققو سققپین‬
‫کی مسلم حکومت نے اپنا قانون بنا دیا۔‬
‫یہ دونوں کام ان بزرگوں کی وفات کے بعد بعد ہوئے ورنہ ان ا ہل علققم کققی وسققعت‬
‫نظری کا یہ عالم تھا کہ وہ اپنے فتاوی اور آرا کو حتمی نہ سمجھتے ت ھے بلکقہ اپنقے س قے‬
‫مختلف رائے کو بھی خندہ پیشانی سے سنا کرتے۔ امام ابو حنیفہ اور مالک کققی زنققدگی‬
‫میں انہیں متعدد مرتبہ حکومت کی طرف سے یہ پیققش کقش ہوئی کقہ ان کقے فققہ کقو‬
‫مملکت کا قانون بنا دیا جائے لیکن انہوں نے اسے قبول نہ کیا۔‬
‫دین کے بنیادی ماخذوں سے متعلق ان اہل علم میں کوئی اختلف نہ تھا۔ یہ سب کے‬
‫سب ہی قرآن اور سنت کو دین کا بنیادی ماخذ مانتے تھے۔ بنیققادی ماخققذوں ک قے علوہ‬
‫ثانوی مآخذ کے بارے میں ان حضرات میں کچھ اختلف رائے تھا۔ جیسا ک قہ امققام مالققک‬
‫اہل مدینہ کے عمل کو بہت اہمیت دیتے ت ھے اور امقام ابقوحنیفہ استحسقان اور عقرف و‬
‫عادت کو اہمیت دیا کرتے تھے۔‬
‫اہل الرائے اور اہل الحدیث‬
‫بعد کے دور میں فقہاء باقاعدہ دو گروہوں میں تقسیم ہو گئے۔ ایک گققروہ ا ہل الققرائے )‬
‫‪ (Rationalists‬کا تھا جبکہ دوسرا اہل الحدیث )‪ (Traditionalists‬کا۔ اہل الققرائے زیققادہ تققر‬
‫عراق میں پھیلے جبکہ اہل الحدیث کقو حجقاز کقے علققے میقں فقروغ حاصقل ہوا۔ ا ہل‬
‫الرائے قیاس اور اجتہاد کو زیادہ اہمیت دیتے اور اہل الحدیث‪ ،‬روایات کو۔‬
‫اگر غور کیا جائے تو ان ائمہ میں اساسی نوعیت کا کوئی اختلف موجود نہیں تھا۔ یہ‬
‫سب حضرات رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ہی کو دین کا ماخذ قرار دیتقے ت ھے۔‬
‫فرق صرف اتنا تھا کہ بعض ائمہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے معلومات کے حصققول‬
‫کے جن ذرائع کو کم اہمیت دیتے تھے‪ ،‬دوسرے انہیں زیادہ اہمیت دیتے ت ھے۔ ا ہل الققرائے‬
‫اس بات کے قائل تھے کہ اگر کوئی حدیث رسول اللہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم سقے‬
‫ثابت ہو جائے تو اپنے قیاس کو ترک کر دینا چاہیے۔ اسی طققرح ا ہل الحققدیث اس بققات‬
‫کے قائل تھے کہ زمانے کی تبدیلی کے ساتھ ساتھ نت نئے پیققدا ہونے وال قے مسققائل میققں‬

‫‪11‬‬
‫قرآن و سنت کے ساتھ ساتھ عقل اور قیاس کو بھی استعمال کرنا چاہیے۔‬
‫اہل الرائے اور اہل الحدیث کے اختلف کی بنیادی وجہ مختلف علقوں میں رہنققا ہے۔‬
‫اگر یہ سب حضرات ایک ہی زمانے اور ایققک ہی شقہر میققں ہوتے تققو لزمقا ً آپققس میققں‬
‫مختلف مسائل پر مکالمہ کرنا ان کے لئے ممکن ہوتا۔ اگرچہ امام ابوحنیفہ اور مالک کے‬
‫درمیان ایک آدھ مرتبہ ملقات بھی ہوئی‪ ،‬لیکن ظاہر ہے ایقک چنققد ایقک ملققاتوں میقں‬
‫مسائل کی ایک طویل فہرست پر مکالمہ کرنققا ممکققن نقہ ت ھا۔ دوسققری طققرف چققونکہ‬
‫عراق مختلف فرقوں اور سیاسی گروہوں کی چپقلش کا مرکز بنا رہا اور ہر گروہ نققے‬
‫اپنے نظریات کے حق میں جعلی حدیثیں ایجاد کر کے پھیلنا شقروع کقر دیقں‪ ،‬اس وجقہ‬
‫سے اہل الرائے کے ہاں حدیث کو قبول کرنے میں زیادہ احتیاط برتی جانے لگی۔‬
‫اہل الرائے اور اہل الحدیث میں اساسی نوعیت کے اتفاق رائے کے باوجود وقت کققے‬
‫ساتھ ساتھ ان گروہوں کے اختلفات میں شدت پیدا ہو گئی اور ہر ایک اپنے اپنے مسلک‬
‫میں شدت برتنے لگا۔ بعض شدت پسند اہل الرائے‪ ،‬اہل الحققدیث پققر روایققت پسققند اور‬
‫کم عقل ہونے کا الزام لگاتے تو دوسری طرف شدت پسند اہل الحدیث‪ ،‬اہل الرائے کو‬
‫منکر حدیث کا خطاب دیتے۔‬
‫اس اختلف کا ایک مثبت اثر بھی وجود پققذیر ہوا۔ ا ہل الققرائے کققی شققدت ن قے ا ہل‬
‫الحدیث کو اس بات پر مجبور کیا کہ وہ احادیث رسول کے ضمن میں زیققادہ سقے زیققادہ‬
‫محنت کریں۔ ان کی محنت کا نقشہ کھینچتے ہوئے شاہ ولی اللہ لکھتے ہیں‪:‬‬
‫فوقع شیوع تدوین الحدیث والثر فی بلدان السلم‪ ،‬و کتقابۃ الصقحف و النسققخ‪ ،‬حققتی‬
‫قل من یکون من اھل الروایۃ ال کان لہ تدوین او صحیفۃ او نسخۃ مققن حققاجتھم لموقققع‬
‫عظیم‪ ،‬فطاف من ادرک من عظمائھم ذلک الزمان بلد الحجققاز و الشققام و العققراق و‬
‫مصر و الیمن و خراسان‪ ،‬و جمعوا الکتب‪ ،‬و تتبعوا النسخ‪ ،‬امعنققوا فققی التفحققص مققن‬
‫غریب الحدیث و نوادر الثر‪ ،‬فاجتمع باھتمام اولئک من الحدیث و الثار مققا لققم یجتمققع‬
‫لحد قبلھم۔۔۔۔و ظھر علیھم احادیث صحیحۃ کثیرۃ لم تظھر علی اھل الفتوی من قبل۔‬
‫)شاہ ولی اللہ‪ ،‬حجۃ اللہ البالغہ‪ ،‬باب ‪(84‬‬
‫احادیث کی تدوین کا عمل مملکت اسلمیہ کے مختلف ش قہروں میققں شققروع ہو گیققا۔‬
‫احادیث کی کتابوں کی تصنیف کا عمل شروع ہوا۔ اہل روایت میں سے شائد ہی ایسا‬
‫کوئی عالم ہو جس نے احادیث کی کتب نہ لکھی ہوں۔ وقت کی ضرورت نے اس کققام‬
‫کی شدید طلب پیدا کر رکھی تھی۔ اہل الحققدیث کقے جلیققل القققدر ا ہل علققم نقے اس‬
‫زمانے میں حجاز‪ ،‬شام‪ ،‬عراق‪ ،‬مصر‪ ،‬یمن اور خراسان )ایران و افغانستان( کا سققفر‬
‫کیا اور کتابوں اور نسخوں کو جمع کیا۔ انہوں نے احادیث و آثار کے نوادر )کققم روایققت‬
‫کی جانے والی احادیث( کو اکٹھا کرنے کا اہتمام کیا اور ایسا ذخیققرہ اکٹ ھا ہو گیققا جققو‬
‫اس سے پہلے نہ ہوا تھا۔ ایسی صحیح احادیث کثیر تعداد میں شائع ہو گئیققں جققو پہل قے‬
‫اہل فتوی کے علم میں نہ تھیں۔‬
‫امام شافعی اور کتاب الرسالہ‬
‫اس دور میں امام شافعی رحمۃ اللہ علیہ )‪204-150‬ھ( پیدا ہوئے۔ ان کا تعلققق فلسققطین‬
‫میں غزہ کے علقے سے تھا۔ ان کے والدین ان کے بچپن ہی میں مکہ میں قیام پققذیر ہو‬
‫گئے۔ مکہ میں قیام کے دوران انہوں نے اہل الحدیث کقے مش قہور ا ہل علققم سققفیان بققن‬
‫عینیہ )وفات ‪198‬ھ( اور مسلم بن خالد الزنجی )وفات ‪179‬ھ( سقے علققم حاصققل کیقا۔ اس‬
‫کے بعد آپ مدینہ چلے گئے اور وہاں جا کققر امققام مالققک سقے ان کقی کتققاب موطققاء کققا‬
‫درس لیا۔ آپ امام مالک کے طریق کار سے بہت متاثر تھے اور ان سقے ن ہایت عقیققدت‬
‫رکھتے تھے۔‬

‫‪12‬‬
‫کچھ عرصے بعد امام شافعی عراق چلے گئے اور وہاں انہوں نے امققام ابققو حنیفقہ کقے‬
‫شاگرد امام محمد بن حسن شیبانی سے تعلیم حاصل کی۔ عراق میں امققام شققافعی‪،‬‬
‫اہل الرائے کی انتہا پسندی سے سخت متنفر ہوئے۔ انہوں نے دیکھا کہ یہ لوگ رسول اللہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی احادیث کی نسبت اپنے اساتذہ کے اقوال و آراء اور فتاوی‬
‫کی تعلیم پر زیادہ زور دیتے ہیں۔ امام شافعی نے اہل الرائے کی اس شدت پسندی کے‬
‫خلف ایک کتاب "الحجۃ" بھی لکھی۔‬
‫دوسری طرف امام صققاحب شققدت پسققند ا ہل الحققدیث کقے طریققق کققار سقے ب ھی‬
‫مطمئن نہ تھے۔ انہوں نے مقطوع اور مرسل احادیث کو قبول کرنے کے بققارے میققں اپنققا‬
‫نقطہ نظر تفصیل سے بیان کیا اور اس ضمن میں اہل الحدیث کے طریق کار پر انہوں‬
‫نے تنقید کی۔ یہ تفصیل کتاب الرسالہ کے اس ترجمے میں دیکھی جا سکتی ہے۔‬
‫کچھ عرصے بعد امام شافعی کو نجران کا قاضی مقرر کیا گیا۔ آپ کققی حققق گققوئی‬
‫کے باعث وہاں کے گورنر سے آپ کے کچھ اختلفات ہو گئے جس کے باعث انہیققں مصققر‬
‫کی طرف کوچ کرنا پڑا۔ مصر میں انہوں نے دیکھا کہ لوگ امام مالک کے اجتہادات کی‬
‫اندھی تقلید میں مبتل ہیں۔ انہوں نے یہ امام مالک کے طریق کار پر تنقیققد کققی اور اس‬
‫میں موجود خامیوں کی طرف توجہ دلئی۔ ان ہوں نقے ایقک کتقاب "اختلف مقع مالقک"‬
‫بھی لکھی۔‬
‫امام شافعی نے اہل الحدیث اور اہل الرائے کے مابین ایک پل کا کام کرتققے ہوئے ان‬
‫دونوں کو چند اصولوں پر اکٹھا کرنے کی کوشش کی۔ ان ہوں نقے دونققوں گرو ہوں کقے‬
‫اصولوں کی غلطی واضح کی۔ ممتاز محقق ڈاکٹر حمید اللہ لکھتے ہیں‪:‬‬
‫‪Shafi'i combined both the qualities in his person. He had acquired Hadith from the‬‬
‫‪masters of the subject and he had learnt law from the masters of analogy. He also‬‬
‫‪had a full command over philosophy and dialectics. In his person, therefore,‬‬
‫‪emerged a scholar who served as a link between the two schools and provided a‬‬
‫‪synthesis. His greatest achievement was that he united the two conflicting schools.‬‬
‫‪He was fully conversant with Hadith and was a leading expert in analogy, inference,‬‬
‫‪deduction and ijtihad As a result he was able to satisfy both the schools. (Dr.‬‬
‫)‪Hamidullah, Emergence of Islam‬‬
‫امام شافعی کی شخصیت میں دونققوں گرو ہوں )ا ہل الحققدیث اور ا ہل الققرائے( کققی‬
‫خصوصیات پائی جاتی تھیں۔ انہوں نے ماہر ترین محدثین سے حققدیث کققا علققم حاصققل‬
‫کیا اور ماہر ترین فقہاء سے فقہ کا علم حاصل کیا۔ انہیں فلسفہ اور جققدلیات پققر ب ھی‬
‫کامل عبور حاصل تھا۔ ایسی شخصیت کی بنیاد پر وہ ایسے عققالم بن قے جن ہوں ن قے ان‬
‫دونوں مکاتب فکر کے مابین رابطے کا کام کیا۔ ان کی سب سے بڑی کامیابی یہ ت ھی‬
‫کہ انہوں نے ان دونوں مکاتب فکر کو اکٹھا کر دیا۔ وہ نہ صرف حدیث پر مکمققل عبققور‬
‫رکھتے تھے بلکہ اس کے ساتھ ساتھ قیاس‪ ،‬استدلل‪ ،‬استخراج اور اجتہاد کے امام ب ھی‬
‫تھے۔ اسی وجہ سے وہ دونوں مکاتب فکر کے اہل علم کو مطمئن کر سکتے تھے۔‬
‫اس دوران امام شافعی نے یہ ضرورت محسوس کققی ک قہ اصققول فق قہ ک قے قواعققد و‬
‫ضوابط کو باقاعدہ مربوط صورت میں پیش کیا جائے۔ یہ کام انہوں نقے "الرسققالہ" کققی‬
‫تصنیف کے ذریعے کیا۔ تمام اہل علم کا اس بات پر اتفاق ہے کہ اصول فقہ کے فن میققں‬
‫یہ پہلی کتاب ہے۔ انہوں نے اس کتاب میں جو اصول بیان کیے ہیں ان کا خلصہ یہ ہے‪:‬‬
‫عام اصول‬
‫• دین کے احکام "البیان" ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ اپنے اولیققن مخققاطبین پققر‬
‫بالکل واضح تھے۔‬

‫‪13‬‬
‫• اللہ تعالی نے اپنے بعض احکام کو اپنی کتاب کے متن میققں واضققح الفققاظ میققں‬
‫بیان کیا ہے اور ان کا مطلب بالکل واضح ہے۔‬
‫• بعض احکامات قرآن مجید میں بیان تو کی قے گئے ہیققں لیکققن ان کققی تفصققیلت‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ذریعے واضح کیا گیا ہے۔‬
‫• بعض احکامات قرآن میں بیان نہیں کیے گئے بلکہ ان کا حکم رسول الل قہ صققلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے دیا ہے۔ قرآن میں ان کے لئے اجمال ً یہ کہہ دیا ہے کہ رسققول‬
‫کی اطاعت و اتباع کی جائے۔‬
‫• بعض ایسے احکامات بھی ہیں جن میں اجتہاد کرنے اور عقل استعمال کرنے کا‬
‫حکم دے کر ان کے تعین کو امت پر چھوڑ دیا گیا ہے۔‬
‫• اجتہاد‪ ،‬قیاس کے ذریعے کیا جائے گا۔ اس میں علمققاء کقے درمیققان اختلف رائے‬
‫ہونا ممکقن ہہہے۔ اگقر ان میقں اجتہ ہاد کرتقے ہ ہوئے اتفقاق رائے ہ ہو جقائے تقو اسقے‬
‫"اجماع" کہتے ہیں۔‬
‫• دینی علم کے دو حصے ہیں۔ ایک تو وہ دینی علم ہے جققو رسققول اللقہ صققلی اللقہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے سے عام لوگوں سے عام لوگوں کو تققواتر سقے منتقققل‬
‫ہوتا آ رہا ہے۔ اسے حاصل کرنا ہر مسلمان کے لئے ضروری ہے۔ جو ایسا نققہ کققرے‬
‫گا وہ گناہ گار ہو گا۔ دینی علم کا دوسرا حصہ وہ ہے جو خاص ذرائع سققے حاصققل‬
‫ہوتا ہے۔ اسے حاصل کرنا علماء کی ذمہ داری ہے۔ اگر وہ اپنققی ذم قہ داری ادا کققر‬
‫دیتے ہیں تو باقی لوگ گناہ گار نہیں ہوتے۔‬
‫قرآن مجید‬
‫• قرآن مجید خالصتا ً عربی زبان میں نازل ہوا۔ یہ زبان اپنے ابتدائی مخاطبین کے‬
‫لئے بالکل واضح تھی۔‬
‫• جو شخص قققرآن کققو بققراہ راسققت سققمجھنا چققاہے‪ ،‬اس کقے لئے لزم ہے کقہ وہ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کقے دور میققں آپ کققی قققوم یعنققی ا ہل مکقہ‬
‫)قریش( کی زبان سیکھے کیونکہ زمانے اور علقے کقے فققرق سقے زبققانوں میققں‬
‫تبدیلیاں واقع ہو جاتی ہیں۔ یہ مخصوص عربی زبان سیکھے بغیر قققرآن کققو بققراہ‬
‫راست سمجھنا درست نہیں۔‬
‫• قرآن میں بعض احکام عمومی اور ابدی نقوعیت کقے ہیقں جقن پقر عمقل کرنقا‬
‫تمام مسلمانوں کے لئے لزم ہے اور بعض احکام خصوصی نوعیت کقے ہیققں جققن‬
‫پر عمل کرنا مخصوص صورتحال ہی میں لزم ہے۔ ان دونققوں میققں فققرق کرنققا‬
‫بہت ضروری ہے۔ بعض احکام ایسے ہوتے ہیں جو عمومی الفاظ میں بیققان کی قے‬
‫جاتے ہیں لیکن ان سے مراد کوئی خصوصققی صققورتحال ہوتی ہے۔ اسققی طققرح‬
‫بعض احکام خصوصی ہوتے ہیں اور اس کی وضاحت سنت سے ہوتی ہے۔‬
‫• قرآن کے ناسخ و منسوخ احکام کا تعین کرنا بہت ضروری ہے۔‬
‫• سنت سے قرآن کے کسی حکم کو منسوخ نہیں کیا جا سکتا۔ سنت قققرآن کققے‬
‫تابع رہ کر اس کی وضاحت کرتی ہے۔‬
‫سنت‬
‫•اللہ کے دین کا معیار رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کققی ذات ہے۔ رسققول‬

‫‪14‬‬
‫کی حیثیت سے جو احکام آپ نے دیے انہیں قبول کرنا ہر مسققلمان کقے لئے لزم‬
‫ہے۔‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جقن کقاموں سقے منقع فرمایقا‪ ،‬ان سقے‬
‫رکنا ضروری ہے۔‬
‫• آپ نے بعض ایسی چیزوں سے منع فرمایا جو ہمیشہ کے لئے حرام ہیں اور بسا‬
‫اوقات بعض کاموں سقے آپ نقے کسققی مخصققوص صققورت حققال ہی میققں منققع‬
‫فرمایا۔ ابدی حرام کاموں سے اجتناب کرنا ہمیشہ ضروری ہے لیکققن مخصققوص‬
‫حالت کی ممانعتوں سے رکنا صرف انہی مخصوص حالت ہی میں ضروری ہے۔‬
‫پہلی قسم کی مثال چوری یا شققراب ہے۔ دوسققری قسققم کققی مثققال روزے کققی‬
‫حالت میں ازدواجی تعلقات قائم کرنا ہے۔‬
‫• احادیث کی روایت میں بسا اوقات کچھ مسققائل پیققدا ہو جققاتے ہیققں جققس کقے‬
‫باعث روایتوں میں تضاد نظر آتا ہے۔ کب ھی ی قہ تضققاد محققض راویققوں کققی غلققط‬
‫فہمی کے باعث پیدا ہوتا ہے اور کبھی ایک حدیث دوسری سے منسوخ ہوا کرتققی‬
‫ہے۔‬
‫• حدیث کبھی بھی قرآن کے مخالف نہیں ہو سققکتی۔ حققدیث صققرف اور صققرف‬
‫قرآن کی وضاحت کرتی ہے۔‬
‫• بعض اوقات روایتوں میں ایک بات جزوی طور پر بیان کی گئی ہوتی ہے جققس‬
‫کی وجہ سے بظاہر احادیث میں اختلف محسوس ہوتا ہے۔ اگر اس موضوع سے‬
‫متعلق تمام روایتوں کو اکٹھا کیا جائے تو پ ھر پققوری بقات درسققت طققور سققمجھ‬
‫میں آ جاتی ہے۔‬
‫• احادیث میں بھی کچھ احادیث کا حکم عمومی نققوعیت کققا )عققام( ہوتققا ہے اور‬
‫کچھ کا تعلق کسی مخصوص صورت حال سے )خاص( ہوا کرتا ہے۔ اس بات کققا‬
‫تعین بہت ضروری ہے۔‬
‫• اگر ایک حدیث دوسری حدیث سے منسوخ ہو تو ہم اس حکم کو قبول کر لیں‬
‫گے جو بعد میں دیا گیا ہو۔‬
‫• اگر دو احادیث ایک دوسرے کے متضاد پائی جائیں‪ ،‬ان میں سے کسی ایققک کققو‬
‫ناسخ اور دوسری کو منسوخ قرار بھی نہ دیا جققا سققکے اور اس تضققاد کققو رفققع‬
‫کرنا ممکن نہ ہو تو پھر ایک حدیث کو چھوڑ کر دوسری زیادہ مستند حققدیث کققو‬
‫قبول کیا جائے گا۔ اس ترجیح کے لئے قرآن‪ ،‬دیگر احادیث اور عقل عامہ کو بنیاد‬
‫بنایا جائے گا۔ اس کی تفصیل کچھ یوں ہے‪:‬‬
‫‪ ‬سب سے پہلے دونوں احادیث کو قرآن پققر پیققش کیققا جققائے گققا اور جققو‬
‫حدیث بھی کتاب اللہ کے زیادہ موافق ہو گی اسے ترجیح دیت قے ہوئے اس قے‬
‫اختیار کر لیا جائے گا۔‬
‫‪ ‬قابل ترجیح روایت وہی ہو گی جسے کے راوی زیققادہ جققانے پہچققانے ہیققں‬
‫اور اپنے علم اور احادیث کو محفوظ کرنے کے معاملے میققں زیققادہ شقہرت‬
‫یافتہ ہیں۔‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جو ایک کی بجائے دو یا زیادہ ذرائع سے ہم‬
‫تک پہنچی ہو گی۔ اس کی وجہ ہے کہ احادیث کو محفوظ کرنقے کققا اہتمققام‬

‫‪15‬‬
‫زیادہ لوگ کم کی نسبت بہتر انداز میں کر سکتے ہیں۔‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گققی جققو کتققاب اللقہ کقے عمققومی معققانی سقے‬
‫بحیثیت مجموعی زیادہ قریب ہو گی یا پھر رسول اللہ صلی اللہ علیققہ و ٰالققہ‬
‫وسلم کی دوسری سنتوں کے زیادہ قریب ہو گی۔‬
‫وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جو اہل علم میں زیادہ جانی پہچانی ہے۔‬ ‫‪‬‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جو قیاس )اور عقل( ک قے زیققادہ قریققب ہو‬
‫گی۔‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جس پر صحابہ کرام رضی الل قہ عن ہم کققی‬
‫اکثریت عمل کرتی ہوگی۔‬
‫• بسا اوقات احادیث میں کوئی حقیقی تضاد نہیں ہوتا۔ یہ محض بات کققو صققحیح‬
‫طور پر نہ سمجھنے کے باعث محسوس ہوتا ہے۔ احققادیث کققا مطققالعہ اگققر دقققت‬
‫نظر سے کیا جائے تو یہ تضاد دور ہو جاتا ہے۔‬
‫• بعض اوقات ایک حدیث میں ایک حکم دیا گیا ہوتا ہے لیکن دوسری حدیث سقے‬
‫یہ واضح ہو جاتا ہے کہ یہ حکم "لزمی یا واجب" نہیں ہے بلکہ ایک افضل عمل ہے۔‬
‫اس کی مثال جمعے کے دن غسل کرنا ہے۔‬
‫• احادیث کو ان کے ظاہری اور عمومی مفہوم میں قبول کیا جائے گا۔ اگر کوئی‬
‫دلیل موجود ہو جس سے یہ معلوم ہو کہ اس حدیث میں مجازی مفہوم مراد ہے‬
‫یا پھر یہ حکم کسی مخصوص صورتحال کے لئے ہے تب اس حدیث کو مجازی یا‬
‫خاص مفہوم میں قبول کیا جائے گا۔‬
‫• اھل علم پر یہ لزم ہے کہ اگر انہیں کوئی دو ایسققی احققادیث مققل جققائیں تققو ان‬
‫میں مطابقت پیققدا کرنقے )‪ (Reconciliation‬کقی کوشققش کریققں‪ ،‬اگققر انہیققں اس‬
‫مطابقت کی کوئی بنیاد مل جائے‪ ،‬نہ کہ انہیققں )فققورا ً ہی( متضققاد قققرار دے دیققں‬
‫جبکہ ان کی تطبیق کا امکان موجود ہو۔‬
‫• اگر ان احادیث کو ایک دوسرے کے مطابق کرنا ممکققن ہو یققا ایسققا کرنقے کققی‬
‫کوئی بنیاد موجود ہو اور ایک حدیث دوسری کی نسبت زیادہ مضققبوط نقہ ہو تقو‬
‫ان احادیث کو متضاد قرار دینا درست نہیں۔ متضاد روایات وہ ہوتی ہیققں جنہیققں‬
‫ایک دوسرے سے ہم آہنگ کرنا ممکن ہی نہ ہو اور ان میں لزما ً ایک کو ترک کققر‬
‫دینا پڑے۔‬
‫• ایک شخص کسی ایک شخص سے اس طرح حدیث کو روایت کرے کققہ وہ نققبی‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم یا آپ کے کسی صحابی تک جا پہنچے تققو ی قہ خققبر واحققد‬
‫کہلتی ہے۔ خبر واحد کو قبول کرنا ضروری ہے اگققر اس میققں ی قہ شققرائط پققائی‬
‫جائیں۔‬
‫‪ ‬حدیث کو بیان کرنے وال راوی اپنے دین کے معاملے میققں قابققل اعتمققاد‬
‫شخص ہو۔‬
‫حدیث کو منتقل کرنے میں اس کی شہرت ایک سچے انسان کی ہو۔‬ ‫‪‬‬
‫جو حدیث وہ بیان کر رہا ہو‪ ،‬اسے سمجھنے کی عقل رکھتا ہو۔‬ ‫‪‬‬
‫الفاظ کی ادائیگی کے نتیجے میں معانی کی جققو تبققدیلی ہو جققاتی ہو‪،‬‬ ‫‪‬‬

‫‪16‬‬
‫اس سے واقف ہو۔‬
‫‪ ‬جن الفققاظ میقں وہ حقدیث کققو سققنے‪ ،‬ان ہی میققں آگقے بیققان کرنقے کقی‬
‫استطاعت رکھتا ہو نہ کہ جو سنے اپنے الفاظ میققں بیققان کققر دے۔ اس کققی‬
‫وجہ یہ ہے کہ جب حدیث کا صرف مفہوم بیان کیا جائے گققا اور بیققان کرن قے‬
‫والے شخص کو یہ علم نہیں ہو گا کہ )حدیث کا محققض مف ہوم بیققان کرن قے‬
‫سے( معنی کس طرح تبدیل ہو جایا کرتے ہیں تو یہ ب ھی ممکققن ہے ک قہ وہ‬
‫کسی حلل حکم کو حرام میں تبدیل کر دے۔ اگر حدیث کو لفظ ب قہ لفققظ‬
‫منتقل کیا جائے گا تو اس میں تبدیلی کا کوئی خطرہ نہیں رہے گا۔‬
‫‪ ‬اگر وہ حدیث کو اپنی یادداشت کے سہارے منتقل کر رہا ہے تققو ی قہ ب ھی‬
‫ضروری ہے کہ وہ حدیث کو اچھی طققرح یققاد کرنقے وال ہو یعنققی اس کققی‬
‫یادداشت کمزور نہ ہو۔‬
‫‪ ‬اگر وہ حدیث کو لکھ کر منتقل کر رہا ہو تققو اس صققورت میققں یقہ ب ھی‬
‫ضروری ہے کہ اس نے جو کچھ لکھا ہو وہ خود اسے یاد رکھنے وال ہو۔‬
‫‪ ‬اگر اس حدیث کو دوسرے حفاظ ب ھی محفققوظ کققر ر ہے ہوں تققو اس‬
‫شخص کی بیان کردہ حدیث ان افراد کی بیان کردہ حدیث کے موافق ہونا‬
‫ضروری ہے۔‬
‫‪ ‬راوی "تدلیس" کے الزام سے بری ہو۔ تدلیس یہ ہے کقہ وہ یقہ ک ہہ دے کقہ‬
‫میں نے حدیث کو فلں سے سنا ہے جبکہ اس کی اس شخص سے ملقات‬
‫نہ ہوئی ہو اور اس نے اس سے حدیث کو اس سے سنا نہ ہو۔ تققدلیس ایققک‬
‫دھوکا ہے۔ تدلیس کرنے والے کی روایت کو قبول نہ کیا جائے گا۔‬
‫‪ ‬راوی نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے ایسی بات منسوب کر دے جققو‬
‫کہ قابل اعتماد راویوں کی بیان کردہ حدیث کے خلف ہو۔‬
‫‪ ‬یہی تمام خصوصیات اس راوی سے اوپر والے راویوں میققں ب ھی پققائی‬
‫جانا ضروری ہے جن سے یہ شخص روایت کر رہا ہے یہاں تک کہ حدیث نبی‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم یا آپ ک قے کسققی صققحابی تققک پہنققچ جققائے ج ہاں‬
‫روایت کا سلسلہ ختم ہو رہا ہے۔ چونکہ راویوں کی اس زنجیر میں موجود‬
‫ہر شخص اس حدیث کو پیش کر رہہہا ہہہے اس وج قہ س قے اوپققر بیققان کققردہ‬
‫صفات کا ان میں سے ہر شخص میں موجود ہونا ضروری ہے۔‬
‫‪ ‬راوی تعصب کا شکار نہ ہو۔ اگر وہ کسی بات کے بارے میں متعصب ہے‬
‫اور اس کے حق یا مخالفت میں حدیث پیش کر رہا ہے تو اس کی حققدیث‬
‫قبول کرنے میں احتیاط کی جائے گی۔‬
‫‪ ‬راوی اگقر کسقی ایسقے معقاملے میقں حقدیث پیقش کقر ر ہا ہے جسقے‬
‫سمجھنے کی اس میں اہلیت نہیں ہے تو اس کققی حققدیث کققو قبققول کرنقے‬
‫میں بھی احتیاط کی جائے گی۔‬
‫راوی حدیث بیان کرنے میں کثرت سے غلطیاں کرنے وال نہ ہو۔‬ ‫‪‬‬
‫• اگر ایک راوی کی بیان کردہ حدیث )خبر واحد( ان شرائط پر پورا اترتی ہے تو‬
‫اسے قبول کیا جائے گا اور یہ ہر اس شخص کے لئے حجقت ہو گقی جققس تققک یقہ‬
‫حدیث پہنچی ہے۔‬

‫‪17‬‬
‫• کوئی شخص کتنا ہی بلند مرتبہ کیوں نہ ہو‪ ،‬اس کی رائے کققو حققدیث کقے خلف‬
‫قبول نہ کیا جائے گا۔ اگر کوئی شخص حدیث کے خلف عمل کر ر ہا ہو اور اس‬
‫تک وہ حدیث پہنچ جائے تو اس پر لزم ہے کہ وہ اپنا عمل ترک کر ک قے حققدیث پققر‬
‫عمل کرے۔‬
‫• اگر کوئی حدیث ایک سے زائد راویوں کے توسط سے پہنچی ہو تو اس کا ثبوت‬
‫مزید مضبوط ہو جاتا ہے اور حدیث کے دیگر پہلوؤں کققی وضققاحت ب ھی ہو جایققا‬
‫کرتی ہے۔‬
‫• حدیث سے اخذ کردہ احکام کققو تققرک کرنققا درسققت نہیققں ہے۔ یقہ صققرف اسققی‬
‫صورت میں جائز ہے اگر حدیث بیان کرنے وال کوئی راوی ناقابل اعتمققاد ہو‪ ،‬یققا‬
‫حدیث میں کوئی ایسی بات ہو جو دوسری صحیح احادیث کے خلف ہو یققا پ ھر‬
‫حدیث کی ایک سے زیادہ توجیہات ممکن ہوں۔‬
‫• منقطع حدیث ایسی حدیث کو کہتے ہیققں جققس کققا سلسققلہ روایققت رسققول اللقہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم تک مل ہوا نہ ہو بلکہ اس میں سے ایققک یققا کئی راویققوں‬
‫کے نام نامعلوم ہوں۔ منقطع حدیث کو عام طور پر قبول نہیں کیا جاتا۔ اسے ان‬
‫صورتوں میں قبول کیا جا سکتا ہے‪:‬‬
‫‪ ‬حدیث کے دیگر ذرائع پر غور کیا جائے گا۔ اگر اسی معنی کی ایققک اور‬
‫حدیث دوسرے سلسلہ سند میں حدیث کو محفوظ رکھنے والے راویوں نے‬
‫روایت کی ہے اور اس کی سند رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم تققک‬
‫پہنچ رہی ہے تو اس سے اس منقطع حدیث کے بارے میققں ب ھی معلققوم ہو‬
‫جائے گا کہ یہ حدیث بھی قابل قبول اور صحیح ہے۔‬
‫‪ ‬یہ دیکھا جائے گا کہ اس منقطع حدیث کو کسی دوسرے ایسققے شققخص‬
‫نے بھی روایت کیا ہے جس کی احادیث عام طور پر اہل علققم ک قے نزدیققک‬
‫قابل قبول ہوتی ہیں۔ اگر ایسی بات ہو تقو اس حقدیث کققو قبققول کققر لیقا‬
‫جائے گا اگرچہ یقہ پہلقے نکتقے میقں بیقان کئے گئے طریققے سقے ثقابت شققدہ‬
‫حدیث کی نسبت کمزور درجے کی ہو گی۔‬
‫‪ ‬اگر ایسا بھی نہ ہو تو یہ دیکھا جائے گا کہ رسول اللہ صلی اللہ علی قہ و ٰال قہ‬
‫وسلم کے کسی صحابی کا قول اس حدیث میں کی گئی بات کے مطابق‬
‫ہے۔ اگر وہ قول رسول اللہ صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم سقے منسققوب اس‬
‫حدیث کے مطابق ہے تو اس سے یہ کہا جا سکتا ہے کہ اگرچہ یہ ایک منقطع‬
‫روایت ہے لیکن اپنی اصل میں درست ہے۔‬
‫‪ ‬اگر اھل علم کی اکثریت عام طور پر حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم‬
‫سے منسوب اس منقطع روایت سے ملتے جلتے مفہوم کے مطققابق فتققوی‬
‫دیتے ہیں تو اس کا بھی یہی معاملہ ہے۔‬
‫‪ ‬ان صورتوں میں اس منقطع حدیث پر اعتبار کیا جائے گا اگققر اس ک قے‬
‫روایت کرنے والے حضرات گمنام نہ ہوں اور نہ ہی ان سے روایت کرنے پققر‬
‫کوئی اعتراض کیا گیا ہو۔ اس صورت میں ان کی روایت کے درست ہونے‬
‫پر اعتماد کیا جا سکتا ہے۔‬
‫• رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی کوئی ایسی حدیث نہیقں ہے جقس کقے‬
‫خلف مسلمانوں کا اجماع ہو گیا ہو۔ ایک حدیث کے بارے میں اہل علققم میققں ی قہ‬

‫‪18‬‬
‫اختلف ہو سکتا ہے کہ وہ مستند حدیث ہے یا نہیں۔‬
‫اجماع‪ ،‬قیاس‪ ،‬اجتہاد اور اختلف رائے‬
‫• مسلمانوں کے ہاں اگر قرآن و سنت کے کسی حکم سے متعلق اتفاق رائے پایا‬
‫جائے گا کہ یہ حکم اللہ تعالی نے ہمیں دیا ہے تو اس اجماع کو قبول کیا جققائے گققا‬
‫اور یہ پوری طرح حجت ہے۔‬
‫• ہر عالم دین حاصل شدہ معلومات کی بنیاد پر اجتہاد اور قیاس کرنے کا مکلف‬
‫ہے۔ جو معلومات اس سے پوشیدہ‪ ،‬وہ ان کی بنیاد پر اجتہاد اور قیققاس کرنقے کققا‬
‫مکلف نہیں ہے کیونکہ یہ اس کی استطاعت سے باہر ہے۔ ہاں یہ ضرور ہے کہ ایققک‬
‫عالم کو اپنے علم میں اضافے کی کوشش کرتے رہنا چاہیے۔‬
‫• اجتہاد دینی احکام معلوم کرنے کے عمل کا نام ہے۔ اگر کسی بارے میققں قققرآن‬
‫و سنت میں کوئی واضح حکم نہ پایا جائے تو پھر اجتہاد کیا جائے گققا اور درسققت‬
‫بات تک پہنچنے کی کوشش کی جائے گی۔‬
‫• اجتہاد میں اختلف رائے ہونا ممکن ہے۔ ہر مجتہد جققب دسققتیاب معلومققات کققی‬
‫بنیاد پر اجتہاد کرے گا تو اس کے نتائج دوسرے عقالم کقے نتقائج سقے مختلقف ہو‬
‫سکتے ہیں۔ ان میں سے ہر عالم اپنے اجتہاد پر عمل کرنے کا مکلف ہو گا اور ان‬
‫پر دوسرے کی رائے کے مطابق عمل کرنا ضروری نہ ہو گا۔‬
‫• اجتہاد و قیاس صرف ایسے عالم کو کرنا چاہیے جو )کتاب و سنت کقے( احکققام‬
‫سے اچھی طرح واقف ہو اور ان احکام سے مشابہت تلش کرنے میں عقل سے‬
‫کام لینا جانتا ہو۔‬
‫• اس شخص کے سوا کسی اور کو قیاس نہیں کرنا چاہیے جو قیاس کی بنیادوں‬
‫سے پوری طرح واقف ہے۔ قیاس کی بنیاد کتاب اللہ کے احکام‪ ،‬اس کے فرائض‪،‬‬
‫اس میں سکھائے گئے آداب‪ ،‬اس کے ناسخ و منسققوخ احکققام‪ ،‬اس ک قے عمققومی‬
‫اور خصوصی احکام‪ ،‬اور اس کی دی ہوئی ہدایات ہیں۔‬
‫• اجتہاد کرتے ہوئے کتاب اللہ کے کسی حکم کی اگر تاویل و توجیہ کققی ضققرورت‬
‫ہو تو ایسا سنت رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی روشنی میں کیا جققائے گققا۔‬
‫اگر سنت نہ ملے تو مسققلمانوں ک قے اجمققاع کققی روشققنی میققں ورن قہ قیققاس کقے‬
‫ذریعے۔‬
‫• کوئی شخص قیاس کرنے کا اہل اس وقت تک نہیں ہے جققب تققک کقہ وہ سققنت‪،‬‬
‫اسلف کے نقطہ ہائے نظر‪ ،‬لوگوں کقے اجمقاع‪ ،‬ان کقے اختلف‪ ،‬اور عربقی زبقان‬
‫سے پوری طرح واقف نہ ہو۔ قیاس کرنے والے کو صققحیح العقققل ہونققا چققاہیے اور‬
‫ایسا اس وقت ہو گا جب وہ بظاہر مشابہ امققور میققں فققرق کرن قے کققی صققلحیت‬
‫رکھتا ہو۔ وہ ثبوت کے بغیر جلد بازی میں رائے قائم کرنے وال نہ ہو۔ وہ اپن قے س قے‬
‫مختلف آراء کو بغیر کسی تعصب کے سننے وال ہو۔‬
‫• انسان کا جھکاؤ ایک رائے کی طرف زیادہ نہیں ہونا چاہیے یہاں تک ک قہ اس قے ی قہ‬
‫علم نہ ہو جائے کہ وہ جو رائے اختیار کرنے جا ر ہا ہے وہ کققس وجقہ سقے دوسققری‬
‫رائے جسے وہ ترک کر رہا ہے سے زیادہ مضبوط ہے۔‬
‫• اگر وہ کسی بات کو سمجھے بغیر محققض یادداشققت ک قے س قہارے محفققوظ کئے‬
‫ہوئے ہے تو اسے بھی قیاس نہیں کرنا چاہیے کیونکہ وہ معانی سے واقف نہیں ہے۔‬

‫‪19‬‬
‫• اگر ایسا شخص جس کی یادداشت اچھی ہے لیکن اس کی عقل میں کمی ہے‬
‫یا وہ عربی زبان سے اچھی طرح واقف نہیں تو اس کے لئے قیاس کققا اسققتعمال‬
‫بھی درسقت نہیقں کیقونکہ وہ ان آلت )‪ (Tools‬یعنقی عققل اور عربقی زبقان کقو‬
‫صحیح طرح استعمال نہیں کر سکتا جن کی قیاس میں ضرورت پڑتی ہے۔‬
‫• اگر اللہ تعالی نے کسی چھوٹی چیز سے منع فرمایا تو اس پر قیاس کرتے ہوئے‬
‫اس سے بڑی چیز کو بھی حرام قرار دیا جائے گا۔ مثل ً بدگمانی پر قیققاس کرت قے‬
‫ہوئے تہمت لگانے‪ ،‬عیب جوئی کرنے اور کسی عزت اچھالنے کو حققرام قققرار دیققا‬
‫جائے گا۔ یہ قیاس کی مضبوط ترین شکل ہے۔‬
‫• اگر کوئی حکم استثنائی صورتحال کقے لئے دیققا گیققا ہو تققو اسقے صققرف اسققی‬
‫صورت تک محدود رکھا جائے گا اور اس پر قیاس نہیں کیا جائے گا۔‬
‫• جو احکام کتاب و سنت میں واضح طور پقر بیقان فرمقا دیقے گئے ہیقں ان سقے‬
‫اختلف کرنا کسی بھی شخص کے لئے جائز نہیں ہے۔ دوسری قسم کے معاملت‬
‫وہ ہیں جس میں کسی آیت یا حدیث کی مختلف توجیہات ممکن ہوں‪ ،‬اس میققں‬
‫قیاس کیا جا سکتا ہو اور ایک تققوجیہ یققا قیققاس کرن قے وال عققالم ایققک معنققی کققو‬
‫اختیار کر لے اور دوسرا دوسرے معنی کو‪ ،‬تو ایسا اختلف جائز ہے۔‬
‫•اگر رسول اللہ صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کقے صققحابہ میققں کسققی مسققئلے پققر‬
‫مختلف نقطہ ہائے نظر پائے جاتے ہوں تو اس نقطہ نظر کو اختیار کیا جائے گا جو‬
‫کتاب اللہ‪ ،‬یا سنت‪ ،‬یا اجماع کے زیادہ قریب ہے یا قیاس کققی بنیققاد پققر جققو زیققادہ‬
‫صحیح ہے۔‬
‫کتاب الرسالہ کے بعد‬
‫کتاب الرسالہ کے بعد اصول فقہ کے فن کو مدون کرنے کا دروازہ کھل گیا۔ امققام احمققد‬
‫بن حنبل )وفات ‪233‬ھ( نے "ناسخ و المنسوخ" اور "السنۃ" کے نام سے دو کتب لکھیققں۔‬
‫داؤد ظاہری )وفات ‪270‬ھ( نے اس موضوع پققر متعققدد کتققب تصققنیف کیققں۔ حنفققی عققالم‬
‫عیسی بن ابان )وفات ‪220‬ھ( نے "خبر الواحد‪ ،‬اثبات القیاس" نے نام س قے کتققاب لک ھی۔‬
‫اس کے بعد اصول فقہ پر تصانیف کا سلسلہ تیز ہو گیا۔ قدیم دور میں لکھی گئی کتب‬
‫کی شروحات لکھی گئیں۔ مختلف نقطہ نظققر رکھنقے والقے ا ہل علققم نقے ان پققر تنقیققد‬
‫لکھی۔ اصول فقہ پر کتب لکھنے کا یہ سلسلہ آج تک جاری ہے۔ مختلف مسالک کقے ا ہل‬
‫علم میں اصولوں کی حد تک ایک عمومی اتفاق رائے پایا جاتا ہے البتہ بعققض تفصققیلت‬
‫میں ان کے ہاں اختلف پایا جاتا ہے۔‬

‫‪20‬‬
‫حصصصصصصصص ہ اول‪:‬‬
‫تعارف‬
‫یہ حصہ کتاب کے تعارف پر مشتمل ہے۔ اس حصے میں امام شافعی نے یہ اصققول بیققان‬
‫کیے ہیں‪:‬‬
‫• دین کے احکام "البیان" ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ اپنے اولیققن مخققاطبین پققر‬
‫بالکل واضح تھے۔‬
‫• اللہ تعالی نے اپنے بعض احکام کو اپنی کتاب کے متققن میققں واضققح الفققاظ میققں‬
‫بیان کیا ہے اور ان کا مطلب بالکل واضح ہے۔‬
‫• بعض احکامات قرآن مجید میں بیان تو کی قے گئے ہیققں لیکققن ان کققی تفصققیلت‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ذریعے واضح کیا گیا ہے۔‬
‫• بعض احکامات قرآن میں بیان نہیں کیے گئے بلکہ ان کا حکم رسقول اللقہ صقلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے دیا ہے۔ قرآن میں ان کے لئے اجمال ً یہ کہہ دیا ہے کقہ رسققول‬
‫کی اطاعت و اتباع کی جائے۔‬
‫• بعض ایسے احکامات بھی ہیں جن میں اجتہاد کرنے اور عقل استعمال کرنے کا‬
‫حکم دے کر ان کے تعین کو امت پر چھوڑ دیا گیا ہے۔‬
‫• اجتہاد‪ ،‬قیاس کے ذریعے کیا جائے گا۔ اس میں علمققاء ک قے درمیققان اختلف رائے‬
‫ہونا ممکن ہے۔ اگر ان میں اجتہاد کرتے ہوئے اتفاق رائے ہو جائے تو اسے "اجماع"‬
‫کہتے ہیں۔‬
‫• دینی علم کے دو حصے ہیں۔ ایک تو وہ دینی علم ہے جققو رسققول اللقہ صققلی اللقہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے سے عام لوگوں سے عام لوگوں کو تققواتر س قے منتقققل‬
‫ہوتا آ رہا ہے۔ اسے حاصل کرنا ہر مسلمان کے لئے ضروری ہے۔ جو ایسققا نقہ کققرے‬
‫گا وہ گناہ گار ہو گا۔ دینی علم کا دوسرا حصہ وہ ہے جو خققاص ذرائع سقے حاصققل‬
‫ہوتا ہے۔ اسے حاصل کرنا علماء کی ذمہ داری ہے۔ اگققر وہ اپنققی ذمقہ داری ادا کققر‬
‫دیتے ہیں تو باقی لوگ گناہ گار نہیں ہوتے۔‬

‫‪21‬‬
‫باب ‪ :1‬تعارف‬
‫بسم اللہ الرح ٰمن الرحیم۔ اللقہ کقے نققام سقے شققروع جققو بققڑا مہربققان ہے اور اس کققی‬
‫شفقت ابدی ہے۔‬
‫ربیع بن سلیمان کہتے ہیں‪:‬‬
‫امام محمد بن ادریس )شافعی( بن عباس بن عثمان بن شافع بن عبید بققن عبققد یزیققد‬
‫بن ھاشم بن مطلب بن عبد مناف المطلبی جو کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‬
‫کے چچا زاد بھائی تھے نے بیان فرمایا‪:‬‬
‫نوٹ‪ :‬قدیم دور میں مسلمانوں کے ہاں یہ رواج رہا ہے کہ وہ کسی کی کتاب کققو پیققش کرت قے ہوئے ان‬
‫تمام ذرائع کا ذکر کرتے جن سے گزر کر وہ کتاب ان تک پہنچی ہے۔ ربیقع بقن سقلیمان‪ ،‬امققام شقافعی‬
‫علیہما الرحمۃ کے اہم ترین شاگردوں میں سے ہیں۔ اس دور میں کتاب کو لوگوں تک پہنچانے کے کئی‬
‫طریق ہائے کار رائج تھے‪:‬‬
‫• ایک عالم کتاب لکھتا اور اپنے شاگردوں کو باقاعدہ اس کی تعلیم دیتا۔‬
‫• عالم کتاب کی املء اپنے شاگردوں کو کرواتا۔ ان کے نسققخوں سقے مزیققد نسققخے تیققار کیقے‬
‫جاتے اور پھیل دیے جاتے۔‬
‫• شاگرد اپنے استاذ کی مجلس میں بیٹھ کر‪ ،‬پوری کاروائی اور مکققالمے نققوٹ کرتققا۔ اس ک قے‬
‫بعد وہ یہ پورا مواد استاذ کو تصحیح کے لئے پیش کرتا اور انہیں اسققتاذ کققی اجققازت ک قے سققاتھ‬
‫دوسرے لوگوں تک پہنچا دیتا۔‬
‫کتاب الرسالہ کے اس نسخے کے بارے میں معلوم ہے کہ اس کی تصنیف کے لئے تیسققرا طریق قہ اختیققار‬
‫کیا گیا۔ ربیع بن سلیمان نے امام شافعی کی تحریروں اور ان کی محافل میں ہونے والققی گفتگققو کققو‬
‫تحریری صورت میں ریکارڈ کیا۔‬

‫تمام تعریفیں اس اللہ کے لئے جس نے آسمانوں اور زمیققن کققو تخلیققق کیققا۔ اس نقے‬
‫اندھیرے اور روشنی کو بنایا۔ اب بھی ایسے لوگ موجققود ہیققں جققو اپن قے رب کقے سققاتھ‬
‫شرک کرتے ہیں۔ ہم اس خدا کی تعریف کرتے ہیں جس کققا شققکر ادا کرنققا ممکققن ہ ہی‬
‫نہیں ہے۔ جب ہم اس کی پہلی نعمتوں کا شکر ادا کرتے ہیں تو وہ اس کقے نققتیجے میققں‬
‫اپنی مزید نعمتیں ہمیں عطا کر دیتا ہے جس کے باعث ہم پر یہ لزم ہو جاتققا ہے کقہ ہم‬
‫اس کا مزید شکر ادا کرتے چلے جائیں۔‬
‫اللہ تعالی کی عظمت کو کوئی شققخص ب ھی اس ک قے شققایان شققان بیققان نہیققں کققر‬
‫سکتا۔ وہی ہے جس نے اپنی تعریف خود کی ہے اور وہ مخلوق کققی کققی گئی تعریفققوں‬
‫سے بلند و بال ہے۔اس کی رحمت اور عظمت کو بیان کرنے کے لئے مجھ پر لزم ہے کققہ‬
‫میں اس کی حمد و ثنا کروں چنانچہ میں ایسا کر رہا ہوں۔‬
‫میں اس کی مدد چاہتا ہوں جس کققی مققدد سقے بققڑھ کققر کسققی اور کققی قققوت اور‬
‫اختیار نہیں ہو سکتا۔ میں اس سے ہدایت کا طلبگار ہوں۔ وہ ہدایت جس سے کوئی منقہ‬
‫موڑ لے تو پھر اسے گمراہ ہونے سے کوئی نہیں روک سکتا۔ میققں اس س قے مغفققرت کققا‬
‫طلبگار ہوں ان گناہوں کے بارے میں جو میں پہلے ہی کقر چکقا یقا جقو آئنقدہ مجقھ سقے‬
‫سرزد ہو سکنے کا امکان ہے۔ یہ اس شخص کی دعا ہے جو یہ جانتا ہے کہ خققدا ک قے آگ قے‬
‫جھکتے ہوئے اپنے گناہوں کا اعتراف کر لینا چاہیے کیونکہ اس کے سوا کوئی گنققاہ معققاف‬
‫نہیں کر سکتا اور اسے سزا سے نہیں بچا سکتا۔ میں اس بات کی گواہی دیتققا ہوں ک قہ‬

‫‪22‬‬
‫اس اکیلے خدا کے سوا کوئی اور خدا نہیں ہے۔ اس کا کوئی شریک نہیں اور محمد اس‬
‫کے بندے اور رسول ہیں۔‬
‫اللہ تعالی نقے محمققد رسققول اللقہ صقلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسقلم کققو اس وقققت نسقل‬
‫انسانیت کی طرف مبعوث فرمایا جب انسان دو گروہوں میں تقسیم ہو چکے تھے۔ ان‬
‫میں سے ایک تو اہل کتاب تھے‪ ،‬جنہوں نے شریعت میں کچھ تبدیلیاں کیں اور اللہ تعالی‬
‫کے بارے میں کفریہ عقائد اختیار کئے۔ انہوں نے غلط چیزیں خود اپنی طرف سے ایجققاد‬
‫کیں اور انہیں اس سچائی کے ساتھ خلط ملط کر دیا جققو الل قہ تعققالی ن قے ان پققر نققازل‬
‫فرمائی تھی۔ اسی وجہ سے اللہ تبارک و تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‬
‫کو ان کے کچھ غلط عقائد کے بارے میں ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫فريقا ً يل ْوو َ‬
‫ن‬
‫م ْ‬‫ما هُوَ ِ‬ ‫ب وَ َ‬‫ن ال ْك َِتا ِ‬ ‫م ْ‬‫سُبوهُ ِ‬ ‫ح َ‬ ‫م ِبال ْك َِتا ِ‬
‫ب ل ِت َ ْ‬ ‫ن أل ْ ِ‬
‫سن َت َهُ ْ‬ ‫َ ُ َ‬ ‫م لَ َ ِ‬ ‫من ْهُ ْ‬ ‫ن ِ‬‫وَإ ِ ّ‬
‫ن عَل َققى الل ّق ِ‬
‫ه‬ ‫قوُلو َ‬ ‫عن ْدِ الل ّهِ وَي َ ُ‬‫ن ِ‬‫م ْ‬ ‫ما هُوَ ِ‬ ‫عن ْدِ الل ّهِ وَ َ‬ ‫ن ِ‬ ‫م ْ‬‫ن هُوَ ِ‬‫قوُلو َ‬ ‫ب وَي َ ُ‬ ‫ال ْك َِتا ِ‬
‫ن۔‬
‫مو َ‬‫م ي َعْل َ ُ‬
‫ب وَهُ ْ‬ ‫ال ْك َذِ َ‬
‫ان میں کچھ لوگ ایسے ہیں جو )اللہ کی( کتاب پڑھتے ہوئے اس طققرح زبققان کققا الققٹ‬
‫پھیر کرتے ہیں کہ تم سمجھو کہ وہ جو کچھ پڑھ رہے ہیں وہ کتاب کی عبارت ہے جبکقہ وہ‬
‫کتاب کی عبارت نہیں ہے۔ وہ کہتے ہیں‪" ،‬یہ تو خدا کی طرف سے ہے" جبکہ وہ خدا کققی‬
‫طرف سے نہیں ہوتا۔ وہ جان بوجھ کر جھوٹ بات اللہ کی طرف منسوب کر دیتے ہیں۔‬
‫) ٰال عمران ‪(3:78‬‬
‫اللہ تعالی مزید ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫عن ْدِ الّلققهِ ل ِي َ ْ‬ ‫َ‬
‫شققت َُروا‬ ‫ن ِ‬
‫م ْ‬‫ذا ِ‬‫ن هَ َ‬‫قوُلو َ‬ ‫م يَ ُ‬‫م ثُ ّ‬ ‫ديهِ ْ‬ ‫ن ال ْك َِتا َ‬
‫ب ب ِأي ْ ِ‬ ‫ن ي َك ْت ُُبو َ‬ ‫ل ل ِل ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫فَوَي ْ ٌ‬
‫ْ‬ ‫َ‬ ‫م وَوَي ْ ٌ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ً‬
‫منا قَِليل فَوَي ْ ٌ‬ ‫ً‬
‫ن۔‬‫سُبو َ‬‫ما ي َك ِ‬‫م ّ‬‫م ِ‬
‫ل لهُ ْ‬ ‫ديهِ ْ‬‫ت أي ْ ِ‬‫ما كت َب َ ْ‬ ‫م ّ‬
‫م ِ‬ ‫ل له ُ ْ‬ ‫ب ِهِ ث َ َ‬
‫ہلکت ہے ان لوگوں کے لئے جو کتاب کو اپنے ہاتھ سے لکھتے ہیں اور کہتے ہیققں‪" ،‬یقہ تققو‬
‫خدا کی طرف سے ہے" تاکہ اس کے عوض تھوڑی سی قیمت وصققول کققر سققکیں۔ ان‬
‫کے ہاتھوں کا یہ لکھا ہوا بھی ان کے لئے تباہی کا سامان ہے اور ان کی یقہ کمققائی ب ھی‬
‫ان کے لئے باعث ہلکت ہے۔ )البقرہ ‪(2:79‬‬

‫ك قَ قوْل ُهُ ْ‬
‫م‬ ‫ن الل ّهِ ذ َل ِ َ‬ ‫ح اب ْ ُ‬ ‫سي ُ‬ ‫م ِ‬ ‫صاَرى ال ْ َ‬ ‫ن الل ّهِ وََقال َ ْ‬
‫ت الن ّ َ‬ ‫ت ال ْي َُهود ُ عَُزي ٌْر اب ْ ُ‬ ‫وََقال َ ْ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫ن۔‬‫ه أن ّققى ي ُؤْفَك ُققو َ‬ ‫م الل ّق ُ‬ ‫ل َقات َل َهُ ْ‬ ‫ن قَب ْ ُ‬‫م ْ‬‫فُروا ِ‬ ‫ن كَ َ‬ ‫ل ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫ن قَوْ َ‬ ‫ضاهُِئو َ‬ ‫م يُ َ‬ ‫واهِهِ ْ‬ ‫ب ِأفْ َ‬
‫ذوا أ َحبارهُم ورهْبانه َ‬
‫مققا‬
‫م وَ َ‬‫مْري َق َ‬
‫ن َ‬ ‫ح اب ْق َ‬ ‫سققي َ‬‫م ِ‬ ‫ن الل ّقهِ َوال ْ َ‬ ‫دو ِ‬ ‫ن ُ‬‫مق ْ‬‫م أْرَباب قا ً ِ‬ ‫ْ َ َ ْ َُ َ َُ ْ‬ ‫خ ُ‬ ‫ات ّ َ‬
‫شرِ ُ‬ ‫َ‬ ‫ً‬ ‫ً‬ ‫َ‬ ‫ُ‬
‫ن۔‬‫كو َ‬ ‫ما ي ُ ْ‬ ‫ه عَ ّ‬ ‫حان َ ُ‬ ‫ه إ ِل ّ هُوَ ُ‬
‫سب ْ َ‬ ‫حدا ل إ ِل َ‬ ‫دوا إ ِلها َوا ِ‬ ‫مُروا إ ِل ّ ل ِي َعْب ُ ُ‬ ‫أ ِ‬
‫یہودی کہتے ہیں‪" ،‬عزیر اللہ کا بیٹا ہے" اور نصرانی کہتے ہیں کہ "مسیح اللہ کا بیٹا ہے۔"‬
‫یہ بے حقیقت باتیں ہیں جو وہ اپنے منہ سے نکالتے ہیں ان لوگوں کی دیکھا دیک ھی جققو‬
‫ان سے پہلے کفر میں مبتل ہوئے۔ خدا کی مار ان پر یہ کہاں سے د ھوکہ ک ھا ر ہے ہیققں۔‬
‫انہوں نے اپنے علماء اور پیروں کو اللہ کے سوا اپنا رب بنا لیا اور اسی طرح مسیح بن‬
‫مریم کو بھی۔ حالنکہ ان کو ایک معبود کے سوا کسی کی بندگی کا حکم نہیں دیا گیققا‬
‫تھا۔ وہ خدا جس کے سوا کوئی خدا نہیں ہے اور وہ پاک ہے اس شرک سے جو یہ کرتققے‬
‫ہیں۔ )التوبہ ‪(31-9:30‬‬
‫ت َوالط ّققا ُ‬ ‫أ َل َم تر إَلى ال ّقذي ُ‬
‫ت‬‫غو ِ‬ ‫ن ب ِققال ْ ِ‬
‫جب ْ ِ‬ ‫ب ي ُؤْ ِ‬
‫من ُققو َ‬ ‫ن ال ْك ِت َققا ِ‬ ‫صققيبا ً ِ‬
‫مق ْ‬ ‫ن أوت ُققوا ن َ ِ‬ ‫ِ َ‬ ‫ْ ََ ِ‬
‫ّ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬
‫ن‬
‫ذي َ‬ ‫َ‬ ‫ً‬
‫سقِبيل۔ أوْلئ ِك الق ِ‬ ‫من ُققوا َ‬ ‫نآ َ‬ ‫ذي َ‬ ‫ن ال ق ِ‬ ‫مق ْ‬ ‫دى ِ‬ ‫ؤلِء أهْق َ‬ ‫فُروا هَ ُ‬ ‫نك َ‬‫َ‬ ‫ذي َ‬‫ن ل ِل ِ‬ ‫قوُلو َ‬‫وَي َ ُ‬
‫صيرا۔ً‬ ‫ه نَ ِ‬ ‫َ‬
‫جد َ ل ُ‬
‫ن تَ ِ‬ ‫َ‬
‫ه فَل ْ‬ ‫ّ‬
‫ن الل ُ‬ ‫ْ‬
‫ن ي َلعَ ْ‬‫م ْ‬‫ه وَ َ‬ ‫ّ‬
‫م الل ُ‬‫ل َعَن َهُ ْ‬
‫کیا تم نے ان لوگوں کو نہیں دیکھا جنہیں کتاب کے علم میں سے کچھ حصہ دیا گیققا ت ھا‬
‫اور ان کا حال یہ ہے کہ وہ توہم پرستی اور شیطانی افعال کو مققانتے ہیققں اور )رسققول‬
‫کا( انکار کرنے والوں کے بارے میں کہتے ہیں کقہ ا ہل ایمقان کقی نسقبت تقو ی ہی زیقادہ‬

‫‪23‬‬
‫سیدھے راستے پر ہیں۔ یہی لوگ ہیں جن پر اللہ نے لعنت کی ہے اور جس پر اللہ لعنققت‬
‫کر دے تم اس کا کوئی مددگار نہ پاؤ گے۔ )النساء ‪(52-4:51‬‬
‫دوسرا گروہ ان لوگوں کا تھا جنہوں نے اللہ تعالی کے بارے میققں غلققط عقیققدہ اختیققار‬
‫کیا اور ایسی چیزیں تخلیق کر ڈالیں جن کی اللہ نے اجققازت نہیققں دی ت ھی۔ ان ہوں نقے‬
‫اپنے ہاتھ سے پتھر اور لکڑی کے بت اور خوش کن تصاویر بنائیں‪ ،‬اپنی طققرف سققے ان‬
‫کے نام گھڑے‪ ،‬انہیں دیوتا قرار دیا اور ان کقی پرسقتش شققروع کقر دی۔ جیسقے ہی وہ‬
‫کسی اور چیز سے متاثر ہوئے تو انہوں نے پہلے دیوتا کو پققرے ہٹققا کققر اپنقے ہاتھوں سقے‬
‫دوسری چیز کا بت بنا ڈال اور اس کی عبققادت شققروع کققر بیٹ ھے۔ ی قہ لققوگ عققرب کقے‬
‫مشرکین تھے۔ اہل عجم نے بھی اسی طریقے سے اہل شرک کی پیروی کی۔ مچھلیققاں‬
‫ہوں یا درندے‪ ،‬ستارے ہوں یا آگ‪ ،‬وہ جس چیز سے بھی متاثر ہہہوئے اسقے پوجنققا شققروع‬
‫کر دیا۔‬
‫انہی اہل شرک کے نظریات کا اللہ تعالی نے اپنے رسول سے ذکر فرمایا ہے اور ان کقے‬
‫اقوال کو اس طرح سے نقل کیا ہے۔‬
‫ُ‬
‫ن۔‬
‫دو َ‬
‫مهْت َ ُ‬ ‫مةٍ وَإ ِّنا عََلى آَثارِهِ ْ‬
‫م ُ‬ ‫جد َْنا آَباَءَنا عََلى أ ّ‬
‫ل َقاُلوا إ ِّنا وَ َ‬
‫بَ ْ‬
‫بلکہ یہ لوگ تو کہتے ہیں کہ ہم نے اپنے باپ دادا کو ایک طریقے پر پایققا تققو ہم ان ہی کقے‬
‫نقش قدم پر چل رہے ہیں۔ )الزخرف ‪(43:22‬‬
‫سققرا ً۔‬ ‫واعا ً َول ي َغُققو َ‬
‫ث وَي َعُققوقَ وَن َ ْ‬ ‫ن وَد ّا ً َول ُ‬
‫سق َ‬ ‫وََقاُلوا ل ت َذ َُر ّ‬
‫ن آل ِهَت َك ُ ْ‬
‫م َول ت َذ َُر ّ‬
‫ضّلوا ك َِثيرا ً ۔‬ ‫َ‬
‫وَقَد ْ أ َ‬
‫انہوں نے کہا‪ ،‬ہرگز اپنے معبودوں کو نہ چھوڑو۔ یعنی ود‪ ،‬سواع‪ ،‬یغوث‪ ،‬یعوق اور نسققر‬
‫کو نہ چھوڑو۔ انہوں نے بہت سے لوگوں کو گمراہ کیا ہے۔ )نوح ‪(24-71:23‬‬
‫َ‬
‫م ت َعْب ُقد ُ‬ ‫ل ل َِبيهِ َيا أب َ ِ‬
‫ت لِ َ‬ ‫ديقا ً ن َب ِي ّا ً۔ إ ِذ ْ َقا َ‬ ‫ص ّ‬‫ن ِ‬ ‫كا َ‬‫ه َ‬
‫م إ ِن ّ ُ‬
‫هي َ‬
‫ب إ ِب َْرا ِ‬‫َواذ ْك ُْر ِفي ال ْك َِتا ِ‬
‫شْيئا ً۔‬‫ك َ‬‫صُر َول ي ُغِْني عَن ْ َ‬ ‫معُ َول ي ُب ْ ِ‬‫س َ‬
‫ما ل ي َ ْ‬ ‫َ‬
‫اس کتاب میں ابراہیم کا تذکرہ کرو۔ بے شک وہ ایک راستباز انسان اور نبی تھے۔ جب‬
‫انہوں نے اپنے والد سے کہا‪" ،‬ابا جان! آپ ان چیزوں کی عبادت کیوں کرتے ہیں جو نققہ‬
‫سنتی ہیں اور نہ دیکھتی ہیں اور نہ ہی آپ کققو کسققی چیققز سقے مسققتغنی کققر سققکتی‬
‫ہیں؟" )مریم ‪(42-19:41‬‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫صققَناما ً‬
‫ن۔ َقاُلوا ن َعْب ُد ُ أ ْ‬‫دو َ‬ ‫ما ت َعْب ُ ُ‬
‫مهِ َ‬ ‫ل ل َِبيهِ وَقَوْ ِ‬‫م۔ إ ِذ ْ َقا َ‬
‫هي َ‬ ‫ل عَل َي ْهِ ْ‬
‫م ن َب َأ إ ِب َْرا ِ‬ ‫َوات ْ ُ‬
‫فعققونك ُم أوَ‬ ‫َ‬ ‫ل ل ََهققا َ‬ ‫فَن َ َ‬
‫ن۔ أوْ ي َن ْ َ ُ َ ْ ْ‬ ‫عو َ‬‫م إ ِذ ْ َتققد ْ ُ‬‫مُعون َك ُ ْ‬ ‫سقق َ‬
‫ل يَ ْ‬ ‫هقق ْ‬
‫ل َ‬ ‫ن۔ َقققا َ‬ ‫في َ‬‫عققاك ِ ِ‬ ‫ظقق ّ‬
‫ن۔‬ ‫ضّرو َ‬ ‫يَ ُ‬
‫انہیں ابراہیم کا واقعہ سناؤ جب انہوں نے اپنے والد اور اپنی قوم سے پوچھا تھا‪" ،‬یہ کیا‬
‫چیزیں ہیں جنہیں تم پوجتے ہو۔" انہوں نے جواب دیا‪" ،‬کچھ بت ہیں جققن کققی ہم پوجققا‬
‫کرتے ہیں اور انہی کی سیوا میں لگے رہتے ہیققں۔" ابراہیققم نقے پوچ ھا‪" ،‬کیققا یقہ تم ہاری‬
‫سنتے ہیں جب تم انہیققں پکققارتے ہو؟ یققا یقہ تمہیققں کچقھ نفققع و نقصققان پہنچققاتے ہیققں۔"‬
‫)الشعراء ‪(73-26:69‬‬
‫اس گروہ کو اپنے احسانات یاد دلتے ہوئے‪ ،‬اور انہیں ان کی عام گمراہیوں سے خققبردار‬
‫کرتے ہوئے اور اہل ایمان پر اپنی خاص نعمتوں کا ذکر کرتے ہوئے اللہ تعالی نے فرمایا‪:‬‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ة اللقه عَل َيك ُقم إذ ْ ك ُنتق َ‬
‫م‬‫حت ُ ْ‬ ‫م فَأ ْ‬
‫صقب َ ْ‬ ‫ن قُل ُققوب ِك ُ ْ‬‫ف ب َي ْق َ‬ ‫داًء فَقأل ّ َ‬
‫م أعْق َ‬
‫ُْ ْ‬ ‫ْ ْ ِ‬ ‫ِ‬ ‫مق َ‬‫َواذ ْك ُُروا ن ِعْ َ‬
‫َ‬ ‫م عََلى َ‬
‫ن‬
‫ك ي ُب َّيق ُ‬ ‫من َْهقا َ‬
‫كقذ َل ِ َ‬ ‫م ِ‬ ‫ققذ َك ُ ْ‬ ‫ن الّنقارِ فَأن ْ َ‬‫م ْ‬
‫فَرةٍ ِ‬
‫ح ْ‬
‫فا ُ‬ ‫ش َ‬ ‫وانا ً وَك ُن ْت ُ ْ‬
‫خ َ‬‫مت ِهِ إ ِ ْ‬
‫ب ِن ِعْ َ‬
‫ن۔‬‫دو َ‬
‫م ت َهْت َ ُ‬ ‫ُ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬
‫م آَيات ِهِ لعَلك ْ‬ ‫ُ‬
‫ه لك ْ‬‫َ‬ ‫الل ُ‬
‫اللہ کے اس احسان کو یاد رکھو جو اس نے تم پر کیا ہے۔ تم ایک دوسققرے ک قے دشققمن‬

‫‪24‬‬
‫تھے‪ ،‬اس نے تمہارے دل جوڑ دیے اور اس کے فضل و کققرم س قے تققم ب ھائی ب ھائی بققن‬
‫گئے۔ تم آگ سے بھرے ایک گڑھے کے کنارے پر کھڑے تھے‪ ،‬اللہ ن قے تمہیققں اس س قے بچققا‬
‫لیا۔ اس طرح اللہ اپنی نشانیاں تمہارے سامنے واضح کرتا ہے تا کہ تمہیں )ان علمتققوں‬
‫سے( اپنے لئے ہدایت نظر آ جائے۔ ) ٰال عمران ‪(3:103‬‬
‫محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ذریعے سے ان لوگوں کے نجات یافتہ ہونے سقے قبقل‬
‫یہ لوگ انفرادی اور اجتماعی طور پر غلط عقائد کا شکار تھے۔ ان کی سب سے بققڑی‬
‫غلط فہمیوں میں یہ چیز شامل تھی کہ یہ لوگ خدا کے بارے میں کفر کرت قے ت ھے اور وہ‬
‫افعال ایجاد کرتے تھے جن کی اس نے اجازت نہیں دی ہے۔ اللہ تعالی اپنے بارے میققں ان‬
‫کی کہی ہوئی باتوں سے بہت بلند و برتر ہے۔ اس کے سوا کققوئی اور خققدا نہیققں ہے۔ وہ‬
‫پاک ہے‪ ،‬تعریف اسی کی ہے اور وہ ہر چیز کا خالق اور پروردگار ہے۔‬
‫ان لوگوں میں سے جو بھی زندہ ہے‪ ،‬جیسا کہ اللہ تعالی نے ان کے بارے میققں فرمایققا‬
‫کہ وہ دنیا میں موجود ہے‪ ،‬کام کاج کر رہا ہے‪ ،‬بول رہا ہے لیکن اس کی حالت یہ ہے کہ وہ‬
‫خدا کی ناراضی اور اس کی بڑھتی ہوئی نافرمانی میں ہی زندگی بسر کر رہا ہے۔ ان‬
‫میں سے جو بھی مر چکا‪ ،‬جیسا کہ اللہ تعالی نے اپنے الفاظ اور اپنے عمل‪ 1‬سے بتققا دیققا‬
‫کہ وہ سزا پا رہا ہے۔‬
‫جب اللہ تعالی کا قانون پورا ہونے کی مدت مکمل ہوئی تققو خققدائی فیصققلہ اس ک قے‬
‫دین کے غلبے کی بنیاد پر ایک زندہ حقیقت بن گیا‪2‬۔ اس ن قے بققرائی ک قے غلب قے ک قے بعققد‬
‫جسے وہ ناپسند کرتا ہے‪) ،‬نیقک لوگققوں کقا انتخقاب کقر کقے انہیققں زمیققن پققر غلبقہ عطقا‬
‫فرمایا۔( اس خدائے بزرگ و برتر نے اپنی آسمانوں کے دروازے کھول کر رحمت برسققا‬
‫دی۔ یہ بالکل ہی ایسا معاملہ تھا جیسا کہ پچھلے زمانوں میں اس کا پہلے سے طے شققدہ‬
‫آسمانی فیصلہ نافذ ہوا۔ اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫ُ‬
‫ن۔‬
‫منذِِري َ‬
‫ن وَ ُ‬
‫ري َ‬ ‫مب َ ّ‬
‫ش ِ‬ ‫ن ُ‬ ‫ث الل ّ ُ‬
‫ه الن ّب ِّيي َ‬ ‫حد َةً فَب َعَ َ‬
‫ة َوا ِ‬
‫م ً‬
‫سأ ّ‬‫ن الّنا ُ‬ ‫َ‬
‫كا َ‬
‫لوگ تو ایک ہی امت تھے۔ )پھر جب انہوں نے گمراہی اختیار کی تو( اللہ نے اپنے نققبیوں‬
‫کو بھیجا جو انہیں بشارت دینے اور خبردار کرنے والے تھے۔ )البقرۃ ‪(2:213‬‬
‫اپنی وحی نازل کرنے اور اپنا پیغام )دنیا تک( پہنچانے کے لئے اللہ تعالی نے جققس ہسققتی‬
‫کا انتخاب کیا‪ ،‬جسے تمام مخلوقات پر فضیلت دی گئی‪ ،‬جس پققر رحمققت کقے دروازے‬
‫کھولے گئے‪ ،‬جس پر نبوت ختم کر دی گئی‪ ،‬پہلے بھیجقے گئے تمققام انبیققاء کقے برعکققس‬
‫جس کی نبوت کو پوری دنیا کے لئے عام کر دیا گیا‪ ،‬جس کا ذکققر اپنقے ذکققر کقے سققاتھ‬
‫اس دنیا میں بلند کیا گیا‪ ،‬جو آخرت میں شفاعت کرنے والوں کے بھی شفیع ہیققں‪ ،‬جققو‬
‫اس کی مخلوق میں انفرادی و اجتماعی طور پر سب س قے افضققل ہیققں‪ ،‬جققن س قے وہ‬
‫دین و دنیا میں راضی ہوا‪ ،‬جن کا نسب اور شہر سب سے بہتر ہے وہ اس کے بنققدے اور‬
‫رسول محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ہیں۔‬
‫ہم جانتے ہیں کہ محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ہمیں اور پوری نسل انسانیت کو‬
‫خاص و عام نعمتوں کے ذریعے دین و دنیا کے فوائد سے بہرہ مند فرمایا۔ اسی کے بارے‬
‫میں اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ص عَل َي ْك ُق ْ‬
‫م‬ ‫ريق ٌ‬
‫ح ِ‬
‫م َ‬ ‫زي قٌز عَل َي ْقهِ َ‬
‫مققا عَن ِت ّق ْ‬ ‫س قك ُ ْ‬
‫م عَ ِ‬ ‫ن َأن ُ‬
‫ف ِ‬ ‫مق ْ‬
‫ل ِ‬‫سققو ٌ‬ ‫جققاَءك ُ ْ‬
‫م َر ُ‬ ‫لَ َ‬
‫ققد ْ َ‬

‫‪ 1‬اشار ہ ہے الل ہ ک ے اس عذاب کی طرف جو اس ن ے اپن ے رسولوں کو ج ھٹلنص ے والصصی‬


‫اقوام پر اسی دنیا میں نازل فرما دیا۔‬
‫‪ 2‬اس ک ے آخری رسول محمد صلی الل ہ علی ہ و ٰال ہ وسلم ک ے زمان ے میصصں یص ہ فیصصصل ہ اللص ہ‬
‫ک ے دین ک ے غلب ے کی صورت میں نافذ ہو چکا ہے۔‬

‫‪25‬‬
‫م۔‬
‫حي ٌ‬
‫ف َر ِ‬
‫ن َرُءو ٌ‬
‫مِني َ‬ ‫ِبال ْ ُ‬
‫مؤْ ِ‬
‫دیکھو‪ ،‬تمہارے پاس ایک ایسا رسققول آئے ہیققں جققو خققود تم ہی میققں سقے ہیققں۔ تم ہارا‬
‫نقصان میں پڑنا ان پر شاق ہے۔ تمہاری فلح کے وہ حریص ہیں اور ایمان لن قے والققون‬
‫کے لئے وہ شفقت فرمانے والے اور نہایت مہربان ہیں۔ )التوبۃ ‪(9:128‬‬
‫ن‬ ‫م ال ْ ُ‬ ‫ُ‬
‫مق ْ‬‫ققَرى وَ َ‬ ‫اللہ تعالی نے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کققو حکققم دیققا کقہ "ل ِت ُن ْقذَِر أ ّ‬
‫حوْل ََها" کہ "آپ شہروں کی ماں اور اس کے گرد و نواح کے لوگوں کو خبردار کریں۔" شہروں کی‬ ‫َ‬
‫ماں سے مراد مکۃ المکرمۃ ہے جو آپ اور آپ کی قوم کا علقہ تھا۔ اس کققے علوہ اللققہ‬
‫ن" یعنی "آپ اپنے قریققب تریققن رشققتے‬ ‫ك ال َقَْرِبي‬ ‫شيَرت َ َ‬ ‫َ‬
‫َ‬ ‫تعالی نے آپ کو حکم دیا کہ " وَأنذِْر عَ ِ‬
‫َ‬
‫ن" یعنققی "‬ ‫س قأُلو َ‬ ‫ف تُ ْ‬
‫سوْ َ‬ ‫م َ‬
‫ك وَ َ‬ ‫قوْ ِ‬
‫ك وَل ِ َ‬‫ه ل َذِك ٌْر ل َ َ‬
‫داروں کو خبردار کریں۔" مزید فرمایا‪ " ،‬وَإ ِن ّ ُ‬
‫آپ اور آپ کی قوم کے لئے یہ تو ایک یاد دہانی ہے اور لزما تم لوگوں سے مواخذہ کیا جائے گا۔"‬
‫سفیان بن عینیہ نے ابن ابی نجیح سے روایت کققی کقہ مجا ہد سقے پوچ ھا گیققا‪" ،‬محمققد‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کس قوم سے تعلققق رکھتقے ت ھے؟" جققواب مل‪" ،‬عققرب قققوم‬
‫سے"۔ پھر پوچھا گیا‪" ،‬عربوں کے کس قبیلے سے"۔ انہوں نے جواب دیا‪" ،‬قریش سے۔"‬
‫اس آیت کے بارے میں مجاہد کی یہ بات اتنی واضح ہے ک قہ اس کققی مزیققد وضققاحت‬
‫کی کوئی ضرورت نہیں۔ اللہ تعالی نے محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی قققوم اور آپ‬
‫کے قریبی رشتے داروں کو )خدا کے عذاب سے( خبردار کرنے کو کہا اور اس حکم میں‬
‫بعد میں آنے والی تمام نسل انسانیت کو شامل کر لیا۔ اس نے قرآن ک قے ذریع قے س قے‬
‫اپنے رسول کا تذکرہ پوری دنیا میں بلند کر دیققا۔ مزیققد بققرآں‪ ،‬اللقہ تعققالی نقے اپنقے اس‬
‫پیغام میں خبردار کرنے کے لئے آپ کی قوم کا بطور خاص ذکر فرمایا۔ قرآن کے بعض‬
‫جلیل القدر علماء نے بیان کیا ہے کہ رسول اللہ صققلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم ن قے ارشققاد‬
‫فرمایا‪" :‬اے بنو عبد مناف! اللہ تعالی نے مجھے اپنے قریبی رشققتے داروں کققو )اس ک قے‬
‫مواخذے سے( خبردار کرنے کا حکم دیا ہے اور تم میرے قریب ترین رشتے دار ہو۔"‬
‫سفیان بن عینیہ‪ ،‬ابن نجیح اور مجاہد کے حوالے سے مجقھ تققک یقہ روایققت پہنچققی ہے۔‬
‫ك )یعنی ہم نے آپ کا تذکرہ بلند کر دیا("‬ ‫مجاہد قرآن مجید کی آیت " وََرفَعَْنا ل َ َ‬
‫ك ذ ِك َْر َ‬
‫کی تشریح بیان کر رہے تھے۔ کہنے لگے‪" ،‬اللہ تعالی یہ فرما رہا ہے کہ ج ہاں ب ھی میققرا‬
‫ذکر ہو گا‪) ،‬اے محمد!( تمہارا بھی ذکر ہو گا۔" )مثال کے طور پر کلمہ شہادت میں ہم‬
‫یہ کہتے ہیں کہ( "میں اس بات کی گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سقوا کققوئی خقدا نہیقں ہے‬
‫اور محمد اس کے رسول ہیں۔"‬
‫اس سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ ایمان کا اقققرار کرن قے اور نمققاز ک قے لئے اذان دین قے‬
‫میں اللہ تعالی کے ساتھ محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کا نام لینا ضروری ہے۔ اس کققا‬
‫مطلب یہ بھی ہو سکتا ہے کہ قرآن کی تلوت کے وقت‪ ،‬اچھے کام کرت قے ہوئے اور بققرے‬
‫کاموں سے بچتے ہوئے بھی آپ کا نام خدا کے نام کے ساتھ لینا چاہیے۔‬
‫اللہ تعالی ہمارے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم پر اپنی رحمت نققازل فرمققائے۔ آپ کققا‬
‫تذکرہ وہی کرتے ہیں جو آپ کو یاد رکھتے ہیں اور آپ کے ذکر سے وہی دور بھاگتے ہیققں‬
‫جو غفلت اختیار کرنے والے ہیں۔ اللہ تعالی آپ پر تمام اولین و آخرین میققں سققب سقے‬
‫بڑھ کر رحمت نازل فرمائے اور آپ کو ان تمققام نعمتققوں سقے عالیشقان نعمققتیں عطققا‬
‫فرمائے جو اس نے اپنی کسی بھی مخلوق پر نازل کیں۔ اس درود کے توسط سے الل قہ‬
‫ہم سب کو نیکی اور تقوی اس سے بڑھ کر نصیب کرے جو اس نے اپنی امت میں سے‬
‫کسی کو بھی عطا کیا ہو۔ سلم ہو محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم پققر اور‬
‫اللہ کی رحمت و برکت ہو۔ ہماری دعا ہے کہ اللہ تعالی نے جققو جققزا کسققی ب ھی سققابق‬
‫پیغمبر کو عطا کئے وہ اس سے بڑھ کر وہ آپ کو عطا فرمائے۔‬

‫‪26‬‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ہی کے ذریعے اللہ تعالی نے ہمیں ہلکت سے نکال اور‬
‫ہمیں اس امت کا حصہ بنایققا جققو اس کقے پسققندیدہ دیققن کققی پیققروی کرنقے کقے بققاعث‬
‫انسانوں میں سب سے بہترین ہے۔ اسقی دیقن کقے بقاعث اس نقے فرشقتوں اور دیگققر‬
‫مخلوقات میں سے اس نے ہمققارا انتخققاب کیققا۔ اللقہ تعققالی نقے اپنققی تمققام ظققاہری اور‬
‫باطنی نعمتیں جن سے ہمیں فائدہ پہنچا یا ہم کسی نقصان سے محفققوظ ر ہے‪ ،‬حضققور‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ہی کی وجہ سے ہم پر نازل فرمائیں۔‬
‫آپ ہر فائدے کے لئے ہمارے راہنما ہیں اور ہر اس ہلکت اور برائی س قے ہمیققں بچققانے‬
‫والے ہیں جو ہدایت کے راستے سے دور لے جاتی ہو۔ آپ ہلکققت کقے راسققتے سقے ہمیققں‬
‫خبردار کرنے والے ہیں۔ ہدایت اور اس کے بارے میں متنب قہ کرن قے میققں آپ ہمققاری خیققر‬
‫خواہی پر قائم ہیں۔ اے اللہ! تیری رحمتیں آپ اور آپ کے خاندان پر اسی طققرح نققازل‬
‫ہوں جس طرح سیدنا ابراہیم علیقہ الصقلوۃ والسقلم اور ان کقے اہ ہل و عیقال پققر نققازل‬
‫ہوئیں۔ بے شک تو ہی تعریف کے قابل اور عظمت وال ہے۔‬
‫اللہ تعالی نے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم پر اپنی کتاب نازل فرمائی جس میققں‬
‫اس نے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫ن‬
‫مق ْ‬ ‫خل ْفِ قهِ َتن ِ‬
‫زي ق ٌ‬
‫ل ِ‬ ‫ن َ‬
‫مق ْ‬
‫ن ي َقد َي ْهِ َول ِ‬
‫ن ب َي ْ ِ‬
‫م ْ‬ ‫زيٌز‪ ،‬ل ي َأ ِْتيهِ ال َْباط ِ ُ‬
‫ل ِ‬ ‫ب عَ ِ‬ ‫ه ل َك َِتا ٌ‬
‫وَإ ِن ّ ُ‬
‫ميدٍ۔‬‫ح ِ‬
‫كيم ٍ َ‬ ‫ح ِ‬ ‫َ‬
‫حقیقت یہ ہے کہ یہ ایک زبردست کتاب ہے‪ ،‬باطل نہ اس کے سامنے سے آ سققکتا ہے اور‬
‫نہ پیچھے سے‪ ،‬یہ ایک نہایت ہی حکمت و دانش رکھنے والے اور قابل تعریف )خدا( کققی‬
‫نازل کردہ ہے۔ )حم سجدہ ‪(42-41:41‬‬
‫اسی کتاب کے ذریعے اللہ تعالی نے محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ک قے پیروکققاروں کققو‬
‫گمراہی اور جہالت کے اندھیروں سقے نکقال کقر انہیقں روشقنی اور ہدایت کقی طقرف‬
‫راہنمائی فرمائی۔ اس نے اس کتاب میں واضح طور پر بتا دیا ہے کہ کیا کام کرنے کققی‬
‫اجازت ہے اور کن کن چیزوں سے اس نے منع فرمایا ہے۔ وہی بہتر جانتا ہے کہ انسققانوں‬
‫کے دنیا اور آخرت میں فائدے کے لئے کیا چیز بہتر ہے اور کیا چیز نقصان دہ؟‬
‫اس نے ان کی اطاعت کا امتحان اس طرح سے لیا کہ کہ ان پر کچھ عقائد و اعمققال‬
‫کا بجا لنا لزم کر دیا اور کچھ کاموں سے اس نے انہیں روک دیا۔ اس اطاعت کققا بققدلہ‬
‫وہ انہیں جنت کی ابدی زندگی کی صورت میں دے گا اور انہیں سزا سے بچققائے گققا اور‬
‫اپنی لمحدود نعمتیں ان پر تمام کر دے گا۔ اس نے انہیں یہ بتا دیا ہے کقہ نافرمقانی کقی‬
‫صورت میں انعام یافتہ لوگوں کے برعکس وہ سزا بھی دے گا۔‬
‫اللہ تعالی نے لوگوں کو سابقہ اقوام کے تجربات سے توجہ دلئی ہے۔ ان لوگققوں ک قے‬
‫پاس مال و دولت اور اولد کی فراوانی تھی۔ یہ لوگ طویل عرصہ زنققدہ رہتقے اور اپنقے‬
‫پیچھے یاد رہ جانے والے کارنامے چھوڑ جاتے۔ یقہ لققوگ اس دنیققا کقی زنققدگی سقے خقوب‬
‫لطف اندوز ہوئے لیکن جب اللہ تعالی کا فیصلہ آیا تو موت نے اچانک انہیققں آ لیققا اور وہ‬
‫اسی زندگی کے اختتام پر اللہ تعالی کے عذاب کا شکار ہو گئے۔‬
‫اس طریقے سے اللہ تعالی نے ان لوگوں کو بعد والوں کے لئے واضح طور پققر بقاعث‬
‫عبرت بنا دیا گیا تاکہ وہ اس روشن نشانی کو سققمجھتے ہوئے اس وقققت کقے آنقے سقے‬
‫پہلے ہی غفلت سے جاگ اٹھیں‪ ،‬وہ وقت آنے سے پہلے نیک عمل کر لیں نہ تو تققوبہ قبققول‬
‫کی جائے گی اور نہ ہی فدیہ لے کر کسی کو چھوڑا جائے گا۔‬
‫سوٍء ت َوَد ّ َلقق ْ‬
‫و‬ ‫ن ُ‬
‫م ْ‬ ‫مل َ ْ‬
‫ت ِ‬ ‫ضرا ً وَ َ‬
‫ما عَ ِ‬ ‫ح َ‬
‫م ْ‬
‫خي ْرٍ ُ‬
‫ن َ‬
‫م ْ‬ ‫مل َ ْ‬
‫ت ِ‬ ‫ما عَ ِ‬
‫س َ‬
‫ف ٍ‬ ‫جد ُ ك ُ ّ‬
‫ل نَ ْ‬ ‫م تَ ِ‬
‫ي َوْ َ‬

‫‪27‬‬
‫مدا ً ب َِعيدا ً۔‬ ‫أ َن بينها وبين َ‬
‫هأ َ‬‫ّ َََْ َََْ ُ‬
‫جس دن ہر شخص اپنے کئے ہوئے عمل کا پھل حاضر پائے گا خواہ اس نققے بھلئی کققی‬
‫ہو یا برائی۔ اس دن ہر انسان ہی تمنا کرے گا کہ کاش! ابھہہی ی قہ دن بہہہت دور ہوتققا۔۔۔‬
‫)ال عمران ‪(3:30‬‬
‫جو کچھ بھی اللہ تبارک و تعالی نے اس کتاب میں نازل فرمایا ہے وہ اس کے وجققود اور‬
‫اس کی رحمت کا ثبوت ہے۔ جو بھی اس بات کو جانتا ہے‪ ،‬وہ واقعتا ً علم رکھتا ہے اور‬
‫جو اس بات سے ناواقف ہے‪ ،‬وہ واقعتا ً جاہل ہی ہے۔ چونکہ علم کے معققاملے میققں لققوگ‬
‫مختلف طبقات پر مشتمل ہیں اس لئے اس حوالے سے ان کے درجات میں ب ھی فققرق‬
‫ہے۔‬
‫جو بھی علم کی طلب اپنے اندر رکھتا ہے‪ ،‬اس پر ی قہ لزم ہے ک قہ وہ اپن قے علققم میققں‬
‫اضافے کے لئے اپنی ہر ممکن توانائی صرف کرے۔ اس راہ میں آنے والی ہر مشکل پققر‬
‫صبر سے کام لے اور اللہ تعالی کے دین کا علم حاصل کرنے کقے لئے خلققوص نیققت سقے‬
‫جدوجہد کرے خواہ دین کا یہ علم اللہ کی کتاب سے حاصققل ہو یققا اس س قے اسققتدلل و‬
‫استنباط کے ذریعے حاصل ہو۔ طالب علم اللہ تعالی کی مدد طلب کرتا رہے کیونکہ اس‬
‫کی مدد کے بغیر کوئی خیر حاصل کرنا ممکن نہیں ہے۔‬
‫اللہ تعالی کی کتاب سے جو صاحب علم بھی اس کے احکامات اخذ کرتا ہے‪ ،‬خواہ ی قہ‬
‫احکامات اس کے متن سے براہ راست حاصل ہوں یققا اسققتدلل و اسققتنباط ک قے ذریع قے‬
‫اخذ کیے جائیں‪ ،‬اللہ کی مدد اس کے قول و فعل میققں اس کقے شققامل حققال ہوتی ہے‬
‫دنیاوی اور اخروی زندگی میں نیکی کی روش حاصل ہوتی ہے‪ ،‬شققکوک و شققبہات دور‬
‫ہوتے ہیں‪ ،‬عقل و دانش اس کے دل میں گھر کرتی ہے‪ ،‬اور وہ شققخص دینققی معققاملت‬
‫میں امامت کے منصب پر فائز ہوتا ہے۔‬
‫نوٹ‪ :‬اللہ تعالی کی کتاب سے بعض احکام تو اس طرح مل جاتے ہیں کہ آیققت کققا متققن صققاف صققاف‬
‫کسی حکم کو بیان کر رہا ہوتا ہے۔ بعض اوقات کسی آیت میں بیان کی ہوئی بات سے دوسری بققات‬
‫نکلتی ہے جس پر دلئل قائم کرتے ہوئے حکم کو اخذ کیا جاتا ہے۔ اسقے اسققتدلل کہتقے ہیققں۔ اس کققی‬
‫مثال اس طرح ہے کہ ققرآن میقں یقہ حکقم بیقان کیقا گیقا ہے کقہ مقرد و خقواتین کقو اپنقی نگقاہوں اور‬
‫شرمگاہوں کی حفاظت کرنا چاہیے۔ یہ حکم نص سے ثابت ہے۔‬
‫اسی حکم سے دلیل پکڑ کر یہ اخذ کیا جائے گا کہ لباس اور نشست و برخاست کے کون کون سے‬
‫طریقے ہیں جو شرم و حیا کے خلف ہیں اور کون سے ایسے ہیں جققو شققرم و حیققا کقے مطققابق ہیققں۔‬
‫اسے استدلل کہتے ہیں۔‬

‫اللہ تعالی جو ہم پر پہلے ہی اپنققی رحمققتیں نققازل فرمققا ر ہا ہے‪ ،‬اگرچقہ ہم اس کقے‬
‫مستحق نہیں ہیں لیکن پھر بھی ہم اس سے دعا کرتے ہیں کہ وہ ہماری کمزوریققوں کققے‬
‫باوجود ان نعمتوں کو ہمیشہ جاری رکھے۔ وہی اللہ جس نے ہمیقں نسقل انسقانیت میقں‬
‫خیر امت کا منصب عطا کیا ہے‪ ،‬ہم دعا کرتے ہیں کقہ وہ ہمیققں اپنققی اور اپنقے نققبی کققی‬
‫سنت کا فہم عطا کرے اور ہمارے قول و عمل کو ایسا بنا دے کہ ہم اس کا حق ادا کققر‬
‫سکیں اور ہمیں اس میں مزید کوشش کی توفیق عطا کرے۔‬
‫اللہ تعالی کے دین کے ماننے والوں پر کوئی ایسی مصیبت نہیں آتی جققس ک قے بققارے‬
‫میں اسے اللہ کی کتاب سے راہنمائی نہ مل رہی ہو۔ اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫م إ ِل َققى‬ ‫ت إ َِلى الن ّققورِ ب ِقإ ِذ ْ ِ‬
‫ن َرب ّهِق ْ‬ ‫ن الظ ّل ُ َ‬
‫ما ِ‬ ‫م ْ‬
‫س ِ‬
‫ج الّنا َ‬
‫خرِ َ‬
‫ك ل ِت ُ ْ‬‫ب َأنَزل َْناهُ إ ِل َي ْ َ‬‫ك َِتا ٌ‬
‫ميدِ۔‬ ‫زيزِ ال ْ َ‬
‫ح ِ‬ ‫ط ال ْعَ ِ‬ ‫صَرا ِ‬‫ِ‬

‫‪28‬‬
‫یہ ایک کتاب ہے جسے تمہاری طرف نازل کیا گیا ہے تاکہ تم لوگققوں کققو تققاریکیوں سقے‬
‫نکال کر روشنی کی طرف لؤ‪ ،‬ان کے رب کی توفیق سے‪ ،‬اسی خدا ک قے راسققتے پققر‬
‫جو بڑا زبردست اور قابل تعریف ہے۔ )ابراہیم ‪(14:1‬‬
‫فك ُّرو َ‬
‫ن۔‬ ‫م وَل َعَل ّهُ ْ‬
‫م ي َت َ َ‬ ‫ل إ ِل َي ْهِ ْ‬
‫ما ن ُّز َ‬
‫س َ‬
‫ن ِللّنا ِ‬ ‫وََأنَزل َْنا إ ِل َي ْ َ‬
‫ك الذ ّك َْر ل ِت ُب َي ّ َ‬
‫اب یہ ذکر تم پر نازل کیا ہے تا کہ تم لوگوں کے سامنے اس تعلیم کی تشریح و توضیح‬
‫کرتے جاؤ جو ان کے لئے اتاری گئی ہے تاکہ وہ لوگ اس میں غور و فکر کریں۔ )النحل‬
‫‪(16:44‬‬
‫ن۔‬
‫مي َ‬
‫سل ِ ِ‬ ‫شَرى ل ِل ْ ُ‬
‫م ْ‬ ‫ة وَب ُ ْ‬
‫م ً‬
‫ح َ‬
‫دى وََر ْ‬
‫يءٍ وَهُ ً‬
‫ش ْ‬ ‫ب ت ِب َْيانا ً ل ِك ُ ّ‬
‫ل َ‬ ‫ك ال ْك َِتا َ‬
‫وَن َّزل َْنا عَل َي ْ َ‬
‫ہم نے یہ کتاب تم پر نازل کی ہے جو صاف صاف ہر چیققز کققی وضققاحت کرتققی ہہہے۔ یقہ‬
‫ہدایت‪ ،‬رحمت اور بشارت ہہہے ان لوگقوں کقے لئے جنہ ہوں نقے )خقدا کقے سقامنے( سقر‬
‫تسلیم خم کر رکھا ہے۔ )النحل ‪(16:89‬‬
‫ك روحا ً م َ‬ ‫وك َذ َل ِ َ َ‬
‫ن‬‫مققا ُ‬
‫لي َ‬
‫ب َول ا ِ‬ ‫مققا ال ْك ِت َققا ُ‬
‫ت ت َقد ِْري َ‬ ‫ما ك ُن ْق َ‬ ‫مرَِنا َ‬ ‫نأ ْ‬ ‫ِ ْ‬ ‫حي َْنا إ ِل َي ْ َ ُ‬‫ك أو ْ َ‬ ‫َ‬
‫ط‬
‫صقَرا ٍ‬ ‫دي إ َِلقى ِ‬ ‫ك ل َت َهْق ِ‬‫عَبادَِنا وَإ ِن ّق َ‬‫ن ِ‬
‫ْ‬ ‫م‬
‫ِ‬ ‫ُ‬ ‫ء‬ ‫َ‬
‫شا‬ ‫َ‬ ‫ن‬ ‫ن‬ ‫م‬
‫ِ َ ْ‬‫ِ‬ ‫ه‬ ‫ب‬ ‫دي‬
‫ِ‬ ‫ْ‬ ‫ه‬‫َ‬ ‫ن‬ ‫ً‬ ‫ا‬ ‫نور‬
‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫ه‬ ‫نا‬‫َ‬ ‫ْ‬ ‫ل‬‫َ‬ ‫ع‬ ‫ج‬
‫َ‬ ‫ن‬‫ْ‬ ‫ِ‬ ‫ك‬‫َ‬ ‫ل‬ ‫وَ‬
‫قيم ٍ۔‬
‫ست َ ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ُ‬
‫اور اسی طرح ہم نے اپنی طرف سے ایک روح تمہاری طرف وحی کی ہے۔ اس س قے‬
‫پہلے تمہیں یہ علم نہ تھا کہ کتاب کیا ہوتی ہے اور ایمان کیا ہوتققا ہے۔ مگققر ہم ن قے اس‬
‫روح کو ایک روشنی بنا دیا ہے جس سے ہم راہ دکھاتے ہیں اپنے بندوں میں سے جسققے‬
‫چاہتے ہیں۔ بے شک تققم سققیدھے راسققتے کققی طقرف راہنمققائی کققر ر ہے ہو۔ )الشققوری‬
‫‪(42:52‬‬

‫‪29‬‬
‫باب ‪ :2‬البیان‬
‫"البیان" ایک وسیع اصطلح ہے جس کے بہت سے معانی ہیں۔ یہ معانی اگققر چ قہ بنیققادی‬
‫طور پر ایک ہی مادے سے نکلے ہیں لیکن ایک دوسرے سے کچھ مختلف ہیققں۔ ان تمققام‬
‫معانی کا ایک مشترک پہلو ہے اور وہ ہے "واضح حکم"۔ یہ حکم ان لوگوں کے لئے بالکل‬
‫متعین اور واضح تھا جن کی زبان میں قرآن نازل ہوا۔ اگرچہ ان کی اہمیت یکساں ہے‬
‫لیکن ان میں سے بعض احکام پر زیادہ زور دے کر انہیں مزید واضح کیقا گیقا ہے۔ ایسقا‬
‫ممکن ہے کہ جو لوگ عربوں کققی زبققان سقے نققاواقف ہیققں‪ ،‬ان کقے لئے ان احکققام کققی‬
‫وضاحت میں کچھ فرق پیدا ہو جائے۔‬
‫اپنے سقابقہ احکقام کقی طقرح اللقہ تعقالی نقے اپنقی کتقاب میقں جقو احکامقات اپنقی‬
‫مخلوقات پر مجموعی طور پر واضح کئے ہیں اور جن کے ذریعے انہیققں اپنققی عبققادت و‬
‫اطاعت کی دعوت دی ہے‪ ،‬کچھ اقسام پر مشتمل ہیں‪:‬‬
‫• پہلی قسم احکامات کا وہ مجموعہ ہے جو اس نے اپنی مخلوق پر لزم کیققا ہے۔‬
‫مثل ً نماز‪ ،‬زکوۃ‪ ،‬حج اور روزہ۔ اس نے کھلے اور چھپے برے کاموں سے منع کیا ہے‬
‫مثل ً بدکاری‪ ،‬شراب‪ ،‬مردار‪ ،‬خون اور خنزیر کا گوشت کھانا۔ الل قہ تعققالی ن قے ی قہ‬
‫واضح کر دیا ہے کہ وضو کیسے کیا جائے۔ اسی طرح اور بہت سے معققاملت ہیققں‬
‫جنہیں اللہ تعالی نے اپنی کتاب کے متن میں واضح طور پر بیان کر دیا ہے۔‬
‫• دوسری قسم ان احکامات پر مشتمل ہے جنہیں اس نے اپنی کتاب میں فققرض‬
‫تو قرار دیا ہے لیکن ان پر عمققل کرنقے کقے طریققے کققی وضققاحت اس نقے اپنقے‬
‫رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ذریعے کی ہے۔ مثال کے طور پر نمازوں کققی‬
‫تعداد‪ ،‬زکوۃ کی شرح‪،‬ان کے اوقات وغیرہ۔ اسی طرح کے مزیققد احکامققات ب ھی‬
‫ہیں جو اس نے اپنی کتاب میں نازل فرمائے ہیں۔‬
‫•تیسری قسم کے احکام وہ ہیں جنہیں اللہ کے رسول صلی اللہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم‬
‫نے اپنے ارشادات یا عمل کے ذریعے متعیقن کقر دیقا ہے لیکقن ان کقے بقارے میقں‬
‫قرآن مجید میں کوئی نص‪ 3‬نہیں ہے۔ اس کے لئے اللہ تعالی نے اپنققی کتققاب میققں‬
‫اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی اطاعت کرنے کا )اجمالی( حکم دے دیقا‬
‫ہے )اور تفصیلت کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم پر چھوڑتے ہوئے( انہیققں‬
‫آپ کے حکم کی طرف رجوع کرنے کا کہا ہے۔ اس طرح سے دین کا جو پیروکققار‬
‫ان احکام کو دین کی حیققثیت سقے قبققول کرتققا ہے‪ ،‬وہ انہیققں )اتبققاع رسققول کقے‬
‫قرآنی( حکم کے تحت ہی قبول کرتا ہے۔‬
‫• چوتھی قسم ان احکام کی ہے جن کے بارے میں اللہ تعالی نقے اپنقے بنققدوں کققو‬
‫اجتہاد کرنے کا حکم دیا ہے اور بالکل اس طریقے سے ان کی اطاعت کا امتحان‬
‫لیا ہے جیسا کہ اس نقے )قققرآن و سققنت کقے( دیگققر احکامققات کقے معققاملے میققں‬
‫امتحان لیا ہے۔ اللہ سبحانہ و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ن وَن َب ْل ُوَ أ َ ْ‬
‫خَباَرك ُ ْ‬
‫م۔‬ ‫ري َ‬
‫صاب ِ ِ‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫م َوال ّ‬ ‫ن ِ‬
‫دي َ‬
‫جاهِ ِ‬ ‫م ال ْ ُ‬
‫م َ‬ ‫حّتى ن َعْل َ َ‬ ‫وَل َن َب ْل ُوَن ّك ُ ْ‬
‫م َ‬
‫ہم ضرور تمہیں آزمائش میں ڈالیں گے تاکہ تمہارے حالت کی جانچ کریققں اور یقہ دیکقھ‬
‫لیں کہ تم میں سے مجاہد اور ثابت قدم کون لوگ ہیں۔ )محمد ‪(47:31‬‬

‫‪ 3‬نص کا مطلب ہے ایس ے واضح الفاظ میں حکم دینا جو کسصصی آیصصت کصصو پڑ ھن ص ے س ص ے‬
‫فورا سمج ھ میں آ جائ ے۔‬

‫‪30‬‬
‫ما ِفي قُُلوب ِك ُ ْ‬
‫م۔‬ ‫ص َ‬
‫ح َ‬
‫م ّ‬ ‫دورِك ُ ْ‬
‫م وَل ِي ُ َ‬ ‫ص ُ‬
‫ما ِفي ُ‬ ‫ي الل ّ ُ‬
‫ه َ‬ ‫وَل ِي َب ْت َل ِ َ‬
‫)یہ تو اس لئے تھا( تاکہ اللہ تمہارے سینوں میں جو کچھ ہے‪ ،‬اسقے آزمقا لقے اور تم ہارے‬
‫دلوں میں جو کھوٹ ہے اسے چھانٹ دے۔ )ال عمران ‪(3:154‬‬
‫ض فََينظ ُقَر ك َي ْق َ‬ ‫َ‬ ‫ل عَسى ربك ُ َ‬
‫ف‬ ‫فك ُ ْ‬
‫م فِققي الْر ِ‬ ‫خل ِ َ‬
‫س قت َ ْ‬ ‫ك عَقد ُوّك ُ ْ‬
‫م وَي َ ْ‬ ‫ن ي ُهْل ِ َ‬
‫مأ ْ‬‫َ ّ ْ‬ ‫َ‬ ‫َقا َ‬
‫ن۔‬ ‫ُ‬
‫ملو َ‬ ‫ت َعْ َ‬
‫قریب ہے وہ وقت جب تمہارا رب تمہارے دشمن کو ہلک کر دے اور تمہیں زمیققن میققں‬
‫حکومت عطا کرے‪ ،‬پھر دیکھے کہ تم کیسا عمل کرتے ہو؟ )العراف ‪(7:129‬‬
‫مسجد الحرام کی طرف رخ کرنے کے لئے اللہ تعالی نے اپنے نبی صلی اللہ علی قہ وسققلم‬
‫کو حکم دیا‪:‬‬
‫شط َْر‬‫ك َ‬‫جه َ َ‬ ‫ها فَوَ ّ‬
‫ل وَ ْ‬ ‫ضا َ‬ ‫ك قِب ْل َ ً‬
‫ة ت َْر َ‬ ‫ماِء فَل َن ُوَل ّي َن ّ َ‬
‫س َ‬ ‫ك ِفي ال ّ‬ ‫جه ِ َ‬‫ب وَ ْ‬‫قل ّ َ‬‫قَد ْ ن ََرى ت َ َ‬
‫شط َْرهُ ۔‬ ‫م َ‬ ‫جوهَك ُ ْ‬ ‫م فَوَّلوا وُ ُ‬ ‫ما ُ‬
‫كنت ُ ْ‬ ‫ث َ‬‫حي ْ ُ‬
‫حَرام ِ وَ َ‬‫جدِ ال ْ َ‬‫س ِ‬‫م ْ‬ ‫ال ْ َ‬
‫یہ تمہارے چہرے کا آسمان کی طرف بار بار اٹھنا ہم دیکھ رہے ہیں۔ لو ہم تمہیققں اسققی‬
‫قبلے کی طرف پھیر دیتے ہیں‪ ،‬جسے تم پسند کرتے ہو۔ اپنے چہرے کققو مسققجد الحققرام‬
‫کی طرف پھیر لو اور جہاں کہیں بھی تم ہو‪ ،‬اسی کی طرف منہ کر کے نماز ادا کرو۔‬
‫)البقرہ ‪(2:144‬‬
‫جدِ ال ْ َ‬
‫حَرام ِ ۔‬ ‫س ِ‬ ‫شط َْر ال ْ َ‬
‫م ْ‬ ‫جهَ َ‬
‫ك َ‬ ‫ت فَوَ ّ‬
‫ل وَ ْ‬ ‫ج َ‬
‫خَر ْ‬
‫ث َ‬
‫حي ْ ُ‬
‫ن َ‬
‫م ْ‬
‫وَ ِ‬
‫تم جہاں سے بھی نکلو‪ ،‬اپنا منہ مسجد الحرام کی طرف پھیر دو۔ )البقرہ ‪( 2:149‬‬
‫اللہ تبارک و تعالی نے انسان کو راہنمائی دی ہے کہ اگر مسجد الحرام ان کققی آنک ھوں‬
‫سے اوجھل ہو تو وہ اپنی عقل استعمال کر کے قبلے کا تعین کریں جو ان پر فرض کیقا‬
‫گیا ہے۔ اسی عقل کے سقہارے انسقان زنقدگی گزارتقا ہے اور اسقی کقے ذریعقے متضقاد‬
‫چیزوں میں فرق کرتا ہے۔ اللہ تعالی نے زمین پر ایسی نشانیاں مقرر کر دی ہیں )جن‬
‫کی مدد سے قبلے کا تعین کیا جا سققکتا ہے۔( ی قہ معققاملہ اس س قے مختلققف ہے کقہ اگققر‬
‫مسجد الحرام آنکھوں کے سامنے ہو تو اس کی طرف )بالکل صققحیح طققور پققر متعیققن‬
‫کر کے( رخ کیا جائے گا۔‬
‫ت ال ْب َّر َوال ْب َ ْ‬
‫حرِ ۔‬ ‫دوا ب َِها ِفي ظ ُل ُ َ‬
‫ما ِ‬ ‫م ل ِت َهْت َ ُ‬
‫جو َ‬ ‫ل ل َك ُ ْ‬
‫م الن ّ ُ‬ ‫جعَ َ‬ ‫وَهُوَ ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬
‫وہی ہے جس نے تمہارے لئے ستاروں کو خشکی اور سمندر کی تققاریکیوں میققں راسققتہ‬
‫معلوم کرنے کا ذریعہ بنایا۔ )النعام ‪(6:97‬‬
‫ن۔‬
‫دو َ‬
‫م ي َهْت َ ُ‬
‫جم ِ هُ ْ‬
‫ت وَِبالن ّ ْ‬
‫ما ٍ‬
‫عل َ‬
‫وَ َ‬
‫اس نے زمین میں راستہ بتانے والی علمات رکھ دیں اور ستاروں کے ذریع قے ب ھی تققم‬
‫راستہ معلوم کرتے ہو۔ )النحل ‪(16:16‬‬
‫پہاڑ‪ ،‬رات‪ ،‬دن‪ ،‬مختلف مخصوص سمتوں سے چلنے والی ہوائیں جققن ک قے نققام مش قہور‬
‫ہیں‪ ،‬سورج‪ ،‬چاند‪ ،‬اور ستاروں کے طلققوع و غققروب کقے مققام اور آسققمان پققر ان کققی‬
‫پوزیشن یہ سب ان علمات میں شامل ہیں۔‬
‫اللہ تعالی نے انسان کو حکققم دیققا ہے کقہ وہ قبلقے کقے تعیققن کقے لئے اپنققی عقققل کققو‬
‫استعمال کرے۔ جب انسان اپنی عقل کو استعمال کرتا ہے تو وہ اللہ کے حکم کے خلف‬
‫غلط طرف رخ کرنے سے بچ جاتا ہے۔ اس نے اس بات کی اجازت نہیققں دی کقہ مسققجد‬
‫الحرام اگر نظر نہ آ رہی ہو تو جس طرف چاہے‪ ،‬منہ کر کے نماز ادا کر لقی جقائے۔ اللقہ‬
‫تعالی نے انسان کے لئے جو فیصلہ جاری کیا ہے اس کققا ذکققر کرت قے ہوئے فرمایققا ہے‪" ،‬‬
‫دى" یعنی "کیا انسان یہ سمجھتا ہے کہ وہ یققونہی مہمققل چ ھوڑ دیققا‬ ‫ن ي ُت َْر َ‬ ‫أ َيحسب النسا َ‬
‫س ً‬
‫ك ُ‬ ‫نأ ْ‬‫ِ َ ُ‬ ‫َ ْ َ ُ‬

‫‪31‬‬
‫جائے گا۔" مہمل چھوڑ دینے سے مراد یہ ہے کہ اسے کسی چیز کا نہ تو حکم دیققا جققائے اور‬
‫نہ ہی کسی چیز سے روکا جائے۔‬
‫اس بحث سے یہ پتہ چلتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالقہ وسققلم کقے علوہ کسققی‬
‫کو یہ حق حاصل نہیں ہے کہ وہ دین کے کسی معاملے میں کوئی فیصلہ کرے سوائے اس‬
‫کے کہ عدالتی معاملت‪ ،‬حالت احرام میں شکار ک قے جرمققانے وغیققرہ میققں انسققان اس‬
‫طریقے سے استدلل کرے جس کا ذکر آگے آ رہا ہے۔ اسی طرح استحسان کی اجققازت‬
‫بھی صرف اسی صورت میں ہے جب کسی ملتے جلتے معاملے کے بارے میں پہلقے سقے‬
‫دیے گئے فیصلے پر قیاس کیا جائے۔‬
‫اللہ تعالی نے انسان کو یہ حکم دیا ہے کہ وہ دو اچھے کردار والقے عققادل مققردوں سقے‬
‫گواہی دلوائیں۔ اچھے کردار کا مطلب یہ ہے کہ وہ شخص الل قہ تعققالی کققی فرمققانبرداری‬
‫کرتا ہو۔ اسی سے اچھے اور برے کردار کا فرق واضح ہوتقا ہے۔ یقہ بحقث اپنقے مناسقب‬
‫مقام پر آئے گی اور میں نے اسے بطور مثال واضح کیا ہے تاکہ ملتے جلتے حققالت میققں‬
‫بھی اسے استعمال کیا جا سکے۔‬

‫بیان ‪ :1‬ایس ےاحکام جن ہیں قرآن ہی میں مزید واضح کر‬


‫دیا گیا‬
‫بیت اللہ کی زیارت کے بارے میں اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫م‬
‫صققَيا ُ‬‫جد ْ فَ ِ‬‫م يَ ِ‬ ‫ن لَ ْ‬
‫م ْ‬‫ي فَ َ‬ ‫ن ال ْهَد ْ ِ‬‫م ْ‬
‫سَر ِ‬‫ست َي ْ َ‬‫ما ا ْ‬ ‫ج فَ َ‬ ‫ح ّ‬ ‫مَرةِ إ َِلى ال ْ َ‬ ‫مت ّعَ ِبال ْعُ ْ‬
‫ن تَ َ‬
‫م ْ‬ ‫فَ َ‬
‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬
‫ن‬‫م ي َكقق ْ‬
‫نل ْ‬ ‫م ْ‬‫ة ذ َل ِك ل ِ َ‬‫مل ٌ‬‫شَرةٌ كا ِ‬ ‫م ت ِلك عَ َ‬ ‫جعْت ُ ْ‬
‫ذا َر َ‬ ‫سب ْعَةٍ إ ِ َ‬
‫ج وَ َ‬ ‫َثلث َةِ أّيام ٍ ِفي ال َ‬
‫ح ّ‬
‫ْ‬ ‫َ‬
‫حَرام ِ ۔‬ ‫جدِ ال َ‬‫س ِ‬‫م ْ‬ ‫ري ال ْ َ‬ ‫ض ِ‬
‫حا ِ‬ ‫ه َ‬ ‫أهْل ُ ُ‬
‫تم میں سے جو شخص حج کے سقاتھ عمقرے کقا فقائدہ اٹھانقا چقاہے‪ ،‬وہ حسقب مقققدور‬
‫قربانی ادا کرے۔ اگر قربانی میسر نہ ہو تو تین روزے حج کے ایام میں اور سققات گ ھر‬
‫پہنچ کر رکھے اور اس طرح سے دس پورے کر لے۔ یہ رعایت ان لوگوں کے لئے ہے جن‬
‫کے گھر مسجد الحرام کے پاس نہ ہوں۔ )البقرۃ ‪(2:196‬‬
‫اس آیت میں جن لوگوں سے خطاب کیا گیققا‪ ،‬وہ اچ ھی طققرح جققانتے ت ھے کقہ حققج کقے‬
‫دوران تین دن کے روزے اور واپققس آنقے کقے بعققد میققں سققات دن کقے روزے رکھنقے کقا‬
‫مقصد دس روزے پورے کرنا ہے۔ اسی لئے اللہ تعالی نے فرمایا کہ یہ دس پققورے کققر لققو۔‬
‫اللہ تعالی کے اس ارشاد کا مطلب یا تو یہ ہے کہ اس سے مزید وضاحت ہو جائے یا پ ھر‬
‫انہیں یہ بتانا مقصود ہے کہ تین اور سات کا مجموعہ دس ہوتا ہے۔ جیسا کہ اس ن قے ایققک‬
‫اور مقام پر فرمایا‪:‬‬
‫ن ل َي ْل َ ً‬ ‫َ‬ ‫وواعَدنا موسى َثلِثين ل َيل َ ً َ‬
‫ة۔‬ ‫ت َرب ّهِ أْرب َِعي َ‬
‫قا ُ‬
‫مي َ‬ ‫شرٍ فَت َ ّ‬
‫م ِ‬ ‫ها ب ِعَ ْ‬
‫مَنا َ‬
‫م ْ‬
‫ة وَأت ْ َ‬ ‫َ ْ‬ ‫َ َ َْ ُ َ‬
‫ہم نے موی کو تیس راتوں کے لئے طلب کیا اور بعد میں دس دن کا اس پر اضافہ کققر‬
‫دیا۔ اس طرح اس کے رب کی مقرر کردہ مدت چالیس دن ہو گئی۔ )العراف ‪(7:142‬‬
‫اس طریقے س ے مخاطبین پر ی ہ واضح کر دیا گیا ک ہ تیس اور دس‪ ،‬چصصالیس‬
‫ہوت ے ہیں ۔‬
‫اللہ تعالی کے اس فرمان میں چالیس راتوں سے یا تو یہی مراد ہے جس پر ہم بات کر‬
‫رہے ہیں کہ تیس اور دس‪ ،‬چالیس ہوتے ہیں اور یا پ ھر اس کقا مقصقد معنقی کقو مزیقد‬
‫واضح کر دینا ہے۔ ایک اور مقام پر ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬

‫‪32‬‬
‫َ‬
‫م‬‫ن قَب ْل ِك ُق ْ‬
‫مق ْ‬‫ن ِ‬ ‫ب عَل َققى ال ّق ِ‬
‫ذي َ‬ ‫مققا ك ُت ِق َ‬ ‫م كَ َ‬‫صَيا ُ‬
‫م ال ّ‬ ‫ب عَل َي ْك ُ ْ‬‫مُنوا ك ُت ِ َ‬ ‫نآ َ‬ ‫ذي َ‬ ‫َيا أي َّها ال ّ ِ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫فرٍ فَِعقد ّةٌ‬ ‫سق َ‬‫ريضا ً أوْ عَل َققى َ‬ ‫م ِ‬‫م َ‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫ن ِ‬ ‫كا َ‬‫ن َ‬ ‫ت فَ َ‬
‫م ْ‬ ‫دا ٍ‬ ‫دو َ‬ ‫ن‪ .‬أّياما ً َ‬
‫معْ ُ‬ ‫قو َ‬ ‫ل َعَل ّك ُ ْ‬
‫م ت َت ّ ُ‬
‫خَر ۔‬‫ن أ َّيام ٍ أ َ‬
‫ُ‬
‫م ْ‬‫ِ‬
‫تم پر روزے فرض کئے گئے ہیں جیسا کہ تم سے پہلی امتوں پر فرض کئے گئے تھے تاکہ‬
‫تم متقی بن سکو۔ چند مقرر دنوں کے یہ روزے ہیں۔ اگر تم میں سے کوئی مریض ہو‬
‫یا سفر میں ہو تو وہ دوسرے دنوں میں اتنی تعداد پوری کر لے۔ )البقرہ ‪(184-2:183‬‬
‫دى‬‫ن ال ُْهق َ‬
‫مق ْ‬
‫ت ِ‬
‫س وَب َي َّنقا ٍ‬‫ِ‬ ‫دى ِللّنقا‬ ‫هق ً‬‫ن ُ‬ ‫ققْرآ ُ‬ ‫ذي ُأنقزِ َ‬
‫ل ِفيقهِ ال ْ ُ‬ ‫ن اّلق ِ‬ ‫ضقا َ‬ ‫م َ‬ ‫شهُْر َر َ‬ ‫َ‬
‫َ‬
‫فرٍ‬ ‫ريضا ً أوْ عََلى َ‬
‫سقق َ‬ ‫م ِ‬
‫ن َ‬ ‫ن َ‬
‫كا َ‬ ‫م ْ‬
‫ه وَ َ‬‫م ُ‬‫ص ْ‬‫شهَْر فَل ْي َ ُ‬ ‫م ال ّ‬‫من ْك ُ ْ‬
‫شهِد َ ِ‬ ‫ن َ‬ ‫م ْ‬‫ن فَ َ‬ ‫فْرَقا ِ‬‫َوال ْ ُ‬
‫ُ‬ ‫َ‬
‫خَر ۔‬ ‫ن أّيام ٍ أ َ‬ ‫م ْ‬ ‫فَعِد ّةٌ ِ‬
‫رمضان وہ مہینہ ہے جس میں قرآن نازل ہوا۔ جو انسانوں کقے لئے سراسققر ہدایت ہے‬
‫اور ایسی واضح تعلیمات پر مشتمل ہے جو راہ راست دکھانے والققی اور حققق و باطققل‬
‫کا فرق کھول دینے والی ہیں۔ اس لئے اب سے جو شخص اس مہین قے کققو پققائے وہ اس‬
‫میں پورے مہینے کے روزے رکھے اور اگر کوئی مریض یا مسافر ہو تو وہ دوسرے دنققوں‬
‫میں گنتی پوری کر لے۔ )البقرہ ‪(2:185‬‬
‫اللہ تعالی نے انسان پر روزے فرض کئے اور یہ متعین کر دیا کہ روزے ایققک مہینقے کقے‬
‫لئے رکھنا ہوں گے۔ ایک مہینہ‪ ،‬دو لگاتار چاند کے نظر آنے کققی درمیققانی مققدت کققو کہتقے‬
‫ہیں جو کہ تیس یا انتیس دن ہو سکتی ہے۔ ان دونوں آیات میں بیان کققردہ قققانون میققں‬
‫اوپر والی دونوں آیات کی طرح جو ہدایت پوشیدہ ہے وہ یہ ہے کہ پورے عققدد کققو صققحیح‬
‫طور پر بیان کر دیا جائے۔‬
‫ان آیات کی قرین قیاس تفسیر یہ ہے کہ سات اور تین کے عدد کو بیان کر دیا جائے‪،‬‬
‫اور تیس اور دس کے عققدد کققو بیققان کققر دیققا جققائے۔ اس طققرح لققوگ صققحیح طققور پققر‬
‫مجموعی عدد کو جان لیں جیسا کہ وہ رمضان کے مہینقے کقے بققارے میققں اس بققات کققو‬
‫جانتے ہیں۔‬

‫بیان ‪ :2‬ایس ے احکام جن ہیں واضح کرن ے کی ضرورت ن ہیں‬


‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫حوا‬
‫سق ُ‬
‫م َ‬
‫ق َوا ْ‬ ‫م إ َِلقى ال ْ َ‬
‫مَراِفق ِ‬ ‫م وَأْيقدِي َك ُ ْ‬ ‫جوهَك ُ ْ‬ ‫سُلوا وُ ُ‬ ‫صلةِ َفاغْ ِ‬ ‫م إ َِلى ال ّ‬ ‫ذا قُ ْ‬
‫مت ُ ْ‬ ‫إِ َ‬
‫جُنبا ً َفاط ّهُّروا ۔‬ ‫ْ‬ ‫جل َك ُ ْ َ‬ ‫َ‬
‫م ُ‬ ‫ن ك ُن ْت ُ ْ‬ ‫ن وَإ ِ ْ‬‫م إ ِلى الك َعْب َي ْ ِ‬ ‫سك ُ ْ‬
‫م وَأْر ُ‬ ‫ب ُِرُءو ِ‬
‫جب تم نماز کے لئے اٹھو تو منہ اور ہاتھ کہنیوں تک دھو لو‪ ،‬سروں پر مسح کقر لقو اور‬
‫پاؤں ٹخنوں تک دھو لو۔ اگر جنابت کی حالت میں ہو تو نہا کر پققاک ہو جققاؤ۔ )المققائدہ‬
‫‪(5:6‬‬

‫جن ُب َا ً إل عابري سبي ٍ‬


‫ل۔‬ ‫ول ُ‬
‫حالت جنابت میں نماز کے قریب نہ جاؤ سوائے اس کے کہ راستے سے گزرنا ہو۔ )النسا‬
‫‪( 4:43‬‬
‫ان آیات کے ذریعے اللہ تعالی نے وضو کی ایک جامع تعریف بیان کققر دی ہے جققس ک قے‬
‫ذریعے ہم وضو کو استنجا اور غسل سے الگ ایک حکم کے طور پر سمجھ سکتے ہیققں۔‬
‫یہاں یہ بیان کر دیا گیا ہے کہ منہ اور ہاتھوں کو کم از کم ایک مرتبہ دھونققا ضققروری ہے۔‬
‫اس حکم میں یہ واضح نہیں تھا کہ کیا انہیں ایک سے زیادہ مرتبہ بھی دھویا جا سکتا ہے؟‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس بققات کققی وضققاحت اس طققرح فرمققائی کقہ‬
‫وضو میں ایک بار دھونے کا حکم دیا لیکن آپ نے خود ان اعضا تیققن مرتب قہ دھویققا۔ اس‬

‫‪33‬‬
‫سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ ایک مرتبہ دھونا تو ضروری ہے اور تین مرتبہ دھونے کا اختیار دیا‬
‫گیا ہے۔‬
‫اسی طرح سنت سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ استنجا کرنے کے لئے تیققن پت ھر درکققار‬
‫ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس بات کی وضققاحت فرمققا دی ک قہ وضققو‬
‫اور غسل سے کیا مراد ہے؟ آپ نے یہ بھی بتا دیا کہ ٹخنوں اور کہنیوں کو دھونا ضروری‬
‫ہے۔ قرآن مجید کے متن سے بظاہر یقہ معلققوم ہوتققا ہہہے کقہ ٹخنققوں کققو پققاؤں دھ ہونے اور‬
‫کہنیوں کو ہاتھ دھونے کے حکم میں شامل کیا بھی جا سکتا ہے اور نہیققں ب ھی۔ رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے )اس کی وضاحت بھی فرمائی اور یہ ب ھی( فرمققا دیققا‪:‬‬
‫"ان دھلی ایڑیوں کو آگ کا عذاب دیا جائے گا۔" اس سے یہ بھی معلوم ہوا کہ پققاؤں کققو دھونققا‬
‫چاہیے نہ کہ ان کا مسح کرنا چاہیے۔‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ن َلقق ُ‬
‫ه‬ ‫ن لَ ْ‬
‫م ي َك ُ ْ‬ ‫ه وَل َد ٌ فَإ ِ ْ‬
‫ن لَ ُ‬ ‫ن َ‬
‫كا َ‬ ‫ك إِ ْ‬‫ما ت ََر َ‬‫م ّ‬‫س ِ‬‫سد ُ ُ‬ ‫ما ال ّ‬ ‫من ْهُ َ‬ ‫حدٍ ِ‬
‫ل َوا ِ‬ ‫وَل َب َوَي ْهِ ل ِك ُ ّ‬
‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫ول َد وورث َ َ‬
‫س۔‬
‫سد ُ ُ‬ ‫مهِ ال ّ‬ ‫خوَةٌ فَل ّ‬ ‫ن لَ ُ‬
‫ه إِ ْ‬ ‫كا َ‬‫ن َ‬‫ث فَإ ِ ْ‬‫مهِ الث ّل ُ ُ‬ ‫واهُ فَل ّ‬ ‫ه أب َ َ‬ ‫َ ٌ َ َ ِ ُ‬
‫اگر میت صاحب اولد ہو تو اس کے والدین میں سے ہر ایک کے لئے اس کے ترکققے کققا‬
‫چھٹا حصہ ہے اور اگر اس کی اولد نہ ہو اور اس کے والدین ہی وارث ہوں تو ماں کققے‬
‫لئے تیسرا حصہ ہے۔ اور اگر میت کے بہن بھائی ہوں تو ماں چھٹے حصے کی حقققدار ہو‬
‫گی۔ )النسا ‪( 4:11‬‬
‫ف ما تر َ َ‬
‫م‬ ‫ن وَل َد ٌ فَل َك ُق ْ‬ ‫ن ل َهُ ّ‬ ‫كا َ‬ ‫ن َ‬ ‫ن وَل َد ٌ فَإ ِ ْ‬ ‫ن ل َهُ ّ‬‫م ي َك ُ ْ‬ ‫ن لَ ْ‬ ‫م إِ ْ‬ ‫جك ُ ْ‬
‫ك أْزَوا ُ‬ ‫ص ُ َ ََ‬ ‫م نِ ْ‬ ‫وَل َك ُ ْ‬
‫َ‬
‫م‬ ‫مققا ت ََرك ُْتق ْ‬‫م ّ‬‫ن الّرُبقعُ ِ‬ ‫ن وَل َُهق ّ‬ ‫ن ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صي َ‬ ‫صي ّةٍ ُيو ِ‬ ‫ن ب َعْدِ وَ ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ن ِ‬‫ما ت ََرك ْ َ‬ ‫م ّ‬ ‫الّرب ُعُ ِ‬
‫ن ب َعْقدِ‬ ‫مق ْ‬ ‫م ِ‬ ‫مققا ت ََرك ْت ُق ْ‬ ‫م ّ‬‫ن ِ‬ ‫مق ُ‬ ‫ن الث ّ ُ‬ ‫م وَل َد ٌ فَل َهُق ّ‬ ‫ن ل َك ُ ْ‬‫كا َ‬ ‫ن َ‬ ‫م وَل َد ٌ فَإ ِ ْ‬ ‫ن ل َك ُ ْ‬ ‫م ي َك ُ ْ‬ ‫ن لَ ْ‬ ‫إِ ْ‬
‫خ أوَ‬ ‫ة أ َو ام قرأ َةٌ ول َقه أ ٌَ‬ ‫َ‬
‫ْ‬ ‫َ ُ‬ ‫كلل َق ً ْ ْ َ‬ ‫ث َ‬ ‫ل ي ُققوَر ُ‬ ‫ج ٌ‬ ‫ن َر ُ‬ ‫كا َ‬ ‫ن َ‬‫ن وَإ ِ ْ‬‫ن ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صو َ‬ ‫صي ّةٍ ُتو ُ‬ ‫وَ ِ‬
‫َ‬ ‫م ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫أُ ْ‬
‫شقَركاُء فِققي‬ ‫ن ذ َل ِك فهُ ْ‬ ‫م ْ‬ ‫ن كاُنوا أكثَر ِ‬ ‫س فإ ِ ْ‬ ‫سد ُ ُ‬ ‫ما ال ّ‬ ‫من ْهُ َ‬ ‫حدٍ ِ‬ ‫ت فل ِكل َوا ِ‬ ‫خ ٌ‬
‫َ‬
‫ه‬‫ن الل ّقهِ َوالل ّق ُ‬ ‫مق ْ‬ ‫ة ِ‬ ‫صقي ّ ً‬ ‫ضققاّر وَ ِ‬ ‫م َ‬ ‫ن غَي ْقَر ُ‬ ‫صى ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صي ّةٍ ُيو َ‬ ‫ن ب َعْدِ وَ ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ث ِ‬ ‫الث ّل ُ ِ‬
‫م۔‬ ‫حِلي ٌ‬ ‫م َ‬ ‫عَِلي ٌ‬
‫تمہاری بیویوں نے جو کچھ ترکہ چھوڑا ہے‪ ،‬تمہارے لئے اس کا نصف حصہ ہے اگققر وہ ب قے‬
‫اولد ہوں۔ اولد ہونے کی صورت میں تم چوتھائی حصے کے حق دار ہو جبکہ میت کققی‬
‫کی گئی وصیت پوری کر دی گئی ہو اور اس پر واجب الدا قرض ادا کر دیققا گیققا ہو۔‬
‫وہ )بیویاں( تمہارے ترکے سے چوتھائی حصے کی حق دار ہوں گی اگقر تقم بقے اولد ہو‬
‫ورنہ صاحب اولد ہونے کی صورت میں ان کا حصہ آٹھواں ہو گا اگر وصیت جو تققم ن قے‬
‫کی تھی‪ ،‬پوری کر دی جائے یا قرض جو تم نے چھوڑا تھا ادا کر دیا جائے۔ اگقر وہ مقرد‬
‫و عورت بے اولد بھی ہو اور اس کے ماں باپ بھی زندہ نہ ہوں‪ ،‬مگر اس کا ایک بھائی‬
‫یا بہن ہو‪ ،‬تو بھائی یا بہن ہر ایک کو چھٹا حصہ ملے گا۔ اگر ب ھائی ب ہن ایققک سقے زیقادہ‬
‫ہوں تو کل ترکے کے تہائی میں وہ سب شریک ہوں گے جبکہ میت کی طرف س قے کققی‬
‫گئی وصققیت پققوری کققر دی جققائے اور میققت پققر واجققب الدا قققرض ادا کققر دیققا جققائے‬
‫بشرطیکہ کسی کو نقصان نہ پہنچایا جائے۔ یہ حکم ہے اللہ کی طرف سے اور اللہ دانا و‬
‫بینا اور نرم خو ہے۔ )النسا ‪( 4:12‬‬
‫قرآن مجید کے ان واضح احکامات کے بعقد دیگققر تفصققیلت غیققر ضقروری ہیقں۔ اللقہ‬
‫تعالی نے یہ شرط عائد کر دی ہے کہ ترکے کی تقسیم سے قبل وصیت پوری کققی جققائے‬
‫اور قرض ادا کئے جائیں۔ یہ بات حدیث سے پتہ چلتی ہے کہ وصیت ترکے کے ایققک ت ہائی‬
‫سے زیادہ نہیں ہونی چاہیے۔‬

‫‪34‬‬
‫بیان ‪ :3‬ایس ے احکام جن کی وضاحت سنت ک ے ذریع ے‬
‫کی گئی‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫موُْقوتا ً ۔‬
‫ن ك َِتابا ً َ‬ ‫ت عََلى ال ْ ُ‬
‫مؤْ ِ‬
‫مِني َ‬ ‫صلةَ َ‬
‫كان َ ْ‬ ‫ن ال ّ‬
‫إِ ّ‬
‫بے شک نماز مومنین پر مقررہ اوقات میں فرض ہے۔۔ )النسا ‪( 4:103‬‬
‫صلةَ َوآُتوا الّز َ‬
‫كاةَ ۔‬ ‫َ‬
‫موا ال ّ‬
‫وَأِقي ُ‬
‫نماز قائم کرو اور زکوۃ دو۔ )البقرۃ ‪( 2:43‬‬
‫مَرةَ ل ِل ّهِ ۔‬ ‫َ‬
‫ج َوال ْعُ ْ‬ ‫موا ال ْ َ‬
‫ح ّ‬ ‫وَأت ِ ّ‬
‫اللہ کے لئے حج اور عمرہ پورا کرو۔ )البقرۃ ‪( 2:196‬‬
‫یہ احکام نازل کرنے کے بعد اللہ تعالی نے اپنے رسول کی زبان سے نمازوں کققی تعققداد‪،‬‬
‫اوقات اور ادائیگی‪ ،‬زکوۃ کی رقم اور اوقات‪ ،‬حج اور عمققرہ کققا طریق قہ اور ان اعمققال‬
‫کی ادائیگی کب ضروری ہے اور کققب نہیققں؟ حضققور صققلی الل قہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققی‬
‫احادیث اس معاملے میں اتفاق بھی رکھتی ہیں اور کچھ اختلف بھی۔ اسی طققرز کققی‬
‫اور مثالیں قرآن اور حدیث میں موجود ہیں۔‬
‫نوٹ‪ :‬احادیث میں بسا اوقات بظاہر اختلف نظر آتا ہے۔ اس کی وجہ ی قہ ہوتی ہے ک قہ حققدیث روایققت‬
‫کرنے والے دو افراد بسا اوقات حدیث کا پس منظر بیان نہیں کر پاتے یا پھر دونققوں احققادیث مختلققف‬
‫مواقع سے متعلق ہوتی ہیں یا پھر کسی ایک صاحب غلط فہمی کی بنیاد پر بات کو کسققی اور طققرح‬
‫بیان کر دیتے ہیں۔ احادیث کو جمع کرنے اور اس کے پس منظققر سقے واقفیققت حاصققل کرن قے سقے یقہ‬
‫تعارض دور ہو جاتا ہے۔‬

‫بیان ‪ :4‬سنت میں بیان کرد ہ احکام‬


‫البیان میں وہ تمام احکام بھی شامل ہیں جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم ن قے‬
‫حدیث میں بیان فرما دیے اگرچہ یہ احکامات قرآن میں بیان نہ ہوئے ہوں۔ جیسققا ک قہ ہم‬
‫نے اپنی اس کتاب میں بیان کیا کہ اللہ تعالی نے اپنے بندوں پر اپنے جس احسان کا ذکر‬
‫کیا ہے کہ اس کے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم انہیققں کتققاب اور حکمققت کققی تعلیققم‬
‫دیتے ہیں‪ ،‬اس بات کی دلیل ہے کہ حکمت سقے مققراد رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کی سنت ہے۔‬
‫میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی اطاعت کے بارے میں اللہ تعالی کققا‬
‫جو حکم بیان کیا ہے وہ اس بات کا ثبوت ہے کہ دین میں اس کی اہمیت کیا ہے؟ قققرآن‬
‫میں اللہ تعالی نے آپ کے جو فرائض بیان کئے ہیں وہ ان اقسام پر مشتمل ہیں‪:‬‬
‫• پہلی قسم تو ان احکام پر مشتمل ہے جو کتاب الل قہ میققں اتنققی وضققاحت س قے‬
‫بیان کر دیے گئے ہیں کہ وحی کے نزول کے بعد مزید کسی وضاحت کی ضرورت‬
‫نہیں ہے۔‬
‫• دوسری قسم کے احکام وہ ہیں جن میں اللہ تعالی کی طرف سے ہم پققر حکققم‬
‫کو اجمال ً فرض کر دیا ہے اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے پققوری‬
‫جامعیت کے ساتھ اللہ تعالی کی طرف سے یقہ )تفصققیلت( بیققان کققر دی ہیققں کقہ‬

‫‪35‬‬
‫کوئی حکم کس طرح فرض ہے؟ کس پر فرض ہے؟ اس میقں سقے کقب کسقی‬
‫حکم پر عمل کرنا لزم ہوتا ہے یا نہیں؟‬
‫• تیسری قسم ان احکام پر مشتمل ہے جو اللہ تعالی نے اپنے رسققول صققلی الل قہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کے ذریعقے متعیقن فرمققائے۔ یقہ احکققام کتقاب اللقہ میقں‬
‫موجود نہیں ہیں۔‬
‫ان میں سے ہر قسم اللہ کے قانون کا بیان ہے۔‬
‫جو شخص اللہ تعالی کی کتاب‪ ،‬قرآن میں بیان کردہ احکامققات پققر عمققل کرن قے کققو‬
‫اپنے لئے مانتا ہے‪ ،‬اس پر یہ بھی لزم ہے کہ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم ک قے‬
‫احکامات پر عمل کرنے کو بھی قبول کرے کیونکہ اس کا حکم کتاب الل قہ میققں موجققود‬
‫ہے۔ جو شخص بھی یہ سمجھتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اللہ تعالی ہہہہی‬
‫کی طرف سے مامور کئے گئے ہیں‪ ،‬اسے یہ بھی ماننا چاہیے کہ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ‬
‫وسلم کی اطاعت بھی خدا نے ہی ہم پر لزم کی ہے۔‬
‫جو فرائض اللہ تعالی کی کتاب اور اس کے رسول صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققی‬
‫سنت میں بیان ہوئے‪ ،‬انہیں مان لینا اس بات کو قبول کر لینا ہے کقہ یقہ سققب اللقہ کققی‬
‫طرف سے ہی ہے۔ جو کچھ وہ قبول کر رہا ہے اس میں اگققر فروعققی نققوعیت کقے کچقھ‬
‫اختلفات بھی ہوں جیسے حلل و حرام یا فرائض اور حدود میققں اختلف۔ کسققی بققات‬
‫کا حکم دیا یا کسی کو سزا دی جیسا کہ اس نے قرآن میں فرمایا ہے‪" ،‬ل ُيسققأل عمققا‬
‫يفعل‪ ،‬وهم يسألون" یعنی "اس )اللہ( سے یہ سوال نہیں کیا جا سکتا ہے کہ اس نے کچھ کیوں کیا‬
‫لیکن )اس کےان بندوں( سے ان کے اعمال کا حساب لیا جائے گا۔"‬

‫بیان ‪ :5‬اجت ہادی امور‬


‫اجتہاد کی پہلی مثال‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫م‬ ‫مققا ُ‬
‫كنت ُق ْ‬ ‫ث َ‬
‫حي ْق ُ‬ ‫جدِ ال ْ َ‬
‫ح قَرام ِ وَ َ‬ ‫سق ِ‬ ‫ش قط َْر ال ْ َ‬
‫م ْ‬ ‫جهَق َ‬
‫ك َ‬ ‫ت فَوَ ّ‬
‫ل وَ ْ‬ ‫ج َ‬‫خَر ْ‬ ‫ث َ‬‫حي ْ ُ‬
‫ن َ‬
‫م ْ‬‫وَ ِ‬
‫ْ‬
‫شطَرهُ ۔‬ ‫م َ‬ ‫جوهَك ُ ْ‬ ‫ّ‬
‫فَوَلوا وُ ُ‬
‫تم جہاں سے بھی نکلو‪ ،‬اپنا منہ مسجد الحرام کی سمت پھیر دو اور جہاں کہیققں ب ھی‬
‫تم ہو‪ ،‬اپنا منہ اسی کی طرف کر لو۔ )البقرہ ‪( 2:150‬‬
‫اس آیت میں اللہ تعالی نے یہ فریضہ عائد کیا ہے کہ لوگ جہاں بھی ہوں اپنا من قہ نمققاز‬
‫کے وقت مسجد الحرام کی طرف کر لیققا کریققں۔ کلم عققرب میققں جققب یقہ ک ہا جققائے‪،‬‬
‫"اقصد شطر کذا" تو اس کا مطلب یہ ہے کقہ "میققں آنک ھوں سقے دیکقھ کققر عیققن اس‬
‫طرف رخ کرنا چاہتا ہوں۔" یعنی کہ بالکل اسی سمت میں منہ کرنا چاہتققا ہوں۔ اگرچ قہ‬
‫الفاظ مختلف ہیں لیکن اس کا مطلب ایک ہی ہے۔ )کلم عرب کے مختلف اشعار میں‬
‫لفظ "شطر" کو اسی معنی میں استعمال کیا گیا ہے۔ امام صاحب نے یہاں کچھ اشعار‬
‫نقل کئے ہیں۔(‬
‫شطر عمرو۔‬ ‫وما تغني الرسالة َ‬ ‫عمرا ً رسول ً‬
‫أل من مبلغ َ‬
‫کوئی ہے جو عمرو کی طرف قاصد بھیجے‪ ،‬اگرچہ عمققرو کققی طققرف جقانے وال پیغققام‬
‫اسے فائدہ نہ پہنچائے گا۔ )خفاف بن ندبہ(‬

‫صدور الِعيس شطر بني تميم ِ‬ ‫أقول لم زِن َْباٍع َأقيمي‬

‫‪36‬‬
‫میں ام زنباع کو کہتا ہوں کہ اونٹنیوں کے رخ کو بنی تمیم کی طرف موڑ دو۔ )سققاعدہ‬
‫بن جویۃ(‬
‫م قِط ََعا‬ ‫ل له ظ ُل َ ٌ‬
‫م تغشاك ُ ُ‬ ‫هو ٌ‬ ‫م من شطر ثغرك ُ ُ‬
‫م‬ ‫وقد أظلك ُ ُ‬
‫تمہاری سرحدوں کی طرف سے تم پر تاریکیوں نے سایہ کر لیققا ہے۔ ی قہ خققوف ہے ک قہ‬
‫تاریکیاں چھا کر تمہیں ٹکڑے ٹکڑے نہ کر دیں۔ )لقیط الیادی(‬
‫صُر العينين مسحوُر‬
‫فشطَرها ب َ َ‬ ‫مخامُرها‬
‫إن العسير بها داٌء ُ‬
‫تھکا ہوا جانور اپنے درد کو چھپائے ہوئے ہے۔ اس کی نگاہیں مسحور ہو کققر اس جققانب‬
‫لگی ہوئی ہیں۔‬
‫"بصر العینین" کا مطلب ہے وہ اس جانب نگاہیں لگائے ہوئے ہے۔ ان تمققام اشققعار میقں‬
‫"شطر" سے مراد کسی چیز کی طرف رخ کرنا ہے۔ اگر وہ اس چیز کو دیکھ رہا ہے تققو‬
‫بالکل درست سمت میں اس کی طرف رخ کرے اور اگر وہ چیز نظققروں سقے اوج ھل‬
‫ہو تو پھر اجتہاد کے ذریعے اس کی طرف رخ کرے۔ یہی بات ہے جو ایک شخص کقے لئے‬
‫ممکن ہے۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ت ال ْب َّر َوال ْب َ ْ‬
‫حرِ ۔‬ ‫دوا ب َِها ِفي ظ ُل ُ َ‬
‫ما ِ‬ ‫م ل ِت َهْت َ ُ‬
‫جو َ‬ ‫ل ل َك ُ ْ‬
‫م الن ّ ُ‬ ‫جعَ َ‬ ‫وَهُوَ ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬
‫وہی ہے جس نے تمہارے لئے ستاروں کو خشکی اور سمندر کی تققاریکیوں میققں راسققتہ‬
‫معلوم کرنے کا ذریعہ بنایا۔ )النعام ‪(6:97‬‬
‫ن۔‬
‫دو َ‬
‫م ي َهْت َ ُ‬
‫جم ِ هُ ْ‬
‫ت وَِبالن ّ ْ‬
‫ما ٍ‬
‫عل َ‬
‫وَ َ‬
‫اس نے زمین میں راستہ بتانے والی علمات رکھ دیں اور ستاروں کے ذریع قے ب ھی تققم‬
‫راستہ معلوم کرتے ہو۔ )النحل ‪(16:16‬‬
‫اللہ تعالی نے زمین پر علمات )‪ (Landmarks‬مقرر کی ہیں‪ ،‬اس نے مسجد الحرام کققو‬
‫)قبلہ( مقرر کیا ہے اور لوگوں کو اس کی جانب رخ کرنے کا حکم دیا ہے۔ قبلقہ رو ہونے‬
‫کے لئے انسان ان علمات کا استعمال اپنی عقل کی قوت کے ذریعے کرے گا جو اسققے‬
‫حاصل ہے۔ وہ اپنی عقل سے ان علمات سے استدلل کرتے ہوئے قبلے کا تعین کرے گا۔‬
‫یہ اللہ تعالی کا واضح فیصلہ اور ہم پر احسان ہے۔‬
‫اجتہاد کی دوسری مثال‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫من ْك ُ ْ‬
‫م۔‬ ‫دوا ذ ََوى عَد ْ ٍ‬
‫ل ِ‬ ‫وَأ َ ْ‬
‫شه ِ ُ‬
‫اپنے میں سے دو اچھے کردار کے افراد کو گواہ بنا لو۔ )الطلق ‪(65:2‬‬
‫ممن ترضون من الشهدا۔‬
‫جن گواہوں پر تم راضی ہو۔ )البقرۃ ‪(2:282‬‬
‫اللہ تعالی نے یہ واضح کر دیا ہے کہ کسی شخص کا "عدل" )یعنی اچھا کققردار( دراصققل‬
‫اللہ کی اطاعت کرنا ہے۔ ایسا شخص جو اللہ کے احکامات پر عمل کرتا ہے‪" ،‬ذو عدل"‬
‫ہے اور جو ایسا نہیں کرتا وہ "ذو عدل" نہیں ہے۔ ایک اور مقام ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫م‪ ،‬ومن قتله منكم متعمدًا‪ ،‬فجزاٌء مث ُ‬
‫ل ما قتل‬ ‫حُر ٌ‬
‫ل تقتلوا الصيد وأنتم ُ‬
‫ً‬
‫م به ذوا عدل منكم هديا بالغَ الكعبة ۔‬ ‫من الن َّعم‪ ،‬يحك ُ‬
‫احرام کی حالت میں شکار مت کرو۔ اور اگر جان بوجھ کر کوئی ایسا کققر بیٹ ھے تققو‬
‫جو جانور اس نے مارا ہے‪ ،‬اسی کے ہم پلہ جانور اسے مویشیوں میں سے قربققان کرنققا‬

‫‪37‬‬
‫ہو گا جس کا فیصلہ تم میں سے دو اچھے کردار والے آدمی کریں گے اور ی قہ نققذر کعب قہ‬
‫تک پہنچائی جائے گی۔ )المائدہ ‪(5:95‬‬

‫نوٹ‪ :‬موجودہ دور کے حالت کے تحت اس حکم کو سمجھنا ذرا مشکل ہے۔ قدیم دور میں ذرائع نقققل‬
‫و حمل چونکہ اتنے ترقی یافتہ نہ تھے اس وجہ سے میقات سے لے کر مکہ تک کا سفر بھی بسققا اوقققات‬
‫کئی دن میں طے ہوتا جس میں خوراک کی قلت کا مسئلہ پیش آ جایا کرتا۔ چونکہ حالت احرام میققں‬
‫خشکی کا شکار ممنوع ہے‪ ،‬اس وجہ سے یہ حکم دیا گیا ہے کہ اگر کوئی کسی جنگلی جانور مثل ہرن‬
‫یا خرگوش کو شکار کر بیٹھے تو وہ اس کے فدیہ میں اس کے مماثل جانور قربان کرے۔ اس کی وجققہ‬
‫یہ ہے کہ یہ جانور عام طور پر شہروں میں دستیاب نہیں ہوا کرتے تھے کہ عین اسی جانور کو فدیہ میں‬
‫قربان کیا جا سکے۔ جانور کی مماثلت کا فیصلہ دو اچھے کردار کے افراد کو کرنا ہے۔‬

‫اس مثال میں اپنے ظاہری مفہوم پر ہم پلہ جانور سے مراد ایسا جانور ہے جققو مقارے‬
‫گئے جانور کے برابر جسم کا حامل ہو۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کققے صققحابہ‬
‫نے اس رائے کا اظہار کیا ہے کہ فدیے کے طققور پققر ایسققا جققانور قربققان کرنققا چققاہیے جققو‬
‫جسمانی اعتبار سے احرام کی حالت میں قتل کئے گئے جانور کے مشقابہ ہو۔ اس وجقہ‬
‫سے ہم مارے گئے جانور کا معائنہ کریں گے اور جو جانور بھی اس سے جسم کے سققائز‬
‫میں ملتا جلتا ہو گا اس کی قربانی بطور نذر کی جائے گی۔‬
‫برابر فدیہ کا مطلب برابر قیمت وال جانور نہیں ہے جیسا ک قہ اس آیققت کققی مجققازی‬
‫تفسیر میں مراد لیا گیا ہے۔ ان دو معقانی میقں سقے ظقاہری معنققی یعنقی جسققم میققں‬
‫مشابہ جانور زیادہ موزوں ہے۔ یہ معنی اجتہاد کے ذریعے متعین کیا گیا ہے۔ فیصققلہ کرن قے‬
‫والے شخص کو نذر کا جانور متعین کرتقے ہوئے ظقاہری معنقی مقراد لیتقے ہوئے برابقر‬
‫جسم والے جانور کو قربان کرنے کا فیصلہ دے۔‬
‫علم )دینی( کی یہ قسم اس بات کی مثال ہے جو میں پہلے ہی بیققان کققر چکققا ہوں۔‬
‫کسی کو بھی دین کے معاملے میں رائے اپنی طرف سے نہیں دینی چاہیے ک قہ "ی قہ حلل‬
‫ہے یا یہ حرام ہے۔" اسے رائے اسی وقت دینی چاہیے جب اس کے پققاس قققرآن و سققنت‬
‫سے حاصل کردہ معلومات یا اجماع و قیاس کی بنیاد پققر علققم موجققود ہو۔ قیققاس کقے‬
‫موضوع پر ہم اس سے متعلق باب میں بحث کریں گے۔ قبلقے کقے تعیققن‪ ،‬اچ ھے کققردار‬
‫اور مشابہ جانور کی مثالوں میں قیاس کے ذریعے یہ معلومات حاصل کی جائیں گی۔‬
‫قیاس عقل کے استعمال کا ایسا طریقہ ہے جن میں قرآن اور سققنت میققں دی قے گئے‬
‫احکام کا اطلق ملتی جلتی صورت حال پر کیا جاتا ہے۔ یہ دونوں حقق بققات جقاننے کقے‬
‫بنیادی ذرائع ہیققں۔ اس کققی مثققال میققں پہلقے ہی تعییققن قبلقہ‪ ،‬اچ ھے کققردار اور مشققابہ‬
‫جانوروں کی صورت میں اوپر بیان کر چکا ہوں۔ قیاس میں دو شققرائط کققا پققورا ہونققا‬
‫ضروری ہے۔‬
‫پہلی شرط تو یہ ہے کہ اگر اللہ تعالی یا اس کے رسول صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم ن قے‬
‫کسی عمل کو قرآن یا سنت کے متن میں واضح طور پر حرام یا حلل قرار دیا ہے تققو‬
‫اس حرمت یا حلت کی وجہ )علت( کی بنیاد پر دوسرے عمل کقو ب ھی‪ ،‬جقس کقا ذکقر‬
‫قرآن یا سنت میں واضح طور پر موجود نہیں‪ ،‬حرام یا حلل قرار دیا جائے گا اگر اس‬
‫میں بھی وہی علت پائی جاتی ہو۔‬
‫دوسری شرط یہ ہے کہ اگر ایک عمل قرآن و سنت میں بیان کردہ ایک حکم س قے دو‬
‫پہلوؤں سے مشابہت رکھتا ہے تو ایسی صورت میں ہم اس پہلققو کققو اختیققار کریققں گقے‬
‫جس میں ان اعمال کی مشابہت ایک دوسرے سے قریب ترین ہے۔ اس کی مثال میققں‬
‫اوپر مشابہ جانور کی صورت میں بیان کر چکا ہوں۔‬

‫‪38‬‬
‫نوٹ‪ :‬قیاس کی ایک مثال یہ ہے کہ دین نے "نشے" کے باعث شراب کو حرام کیا گیا ہے۔ "نشہ" شراب‬
‫کے حرام ہونے کی علت یعنی وجہ ہے۔ اگر یہ نشہ کسی اور چیز میں بھی پایا جائے گا تو وہ بھی حققرام‬
‫قرار پائے گی۔ اسی بنیاد پر اہل علم چرس‪ ،‬ہیروئن‪ ،‬افیون اور دیگر نشہ آور اشققیاء کققو حققرام قققرار‬
‫دیتے ہیں۔‬
‫قیاس کی ایک دلچسپ مثال یہ ہے کہ اسلمی قانون میں اونٹ‪ ،‬گائے اور بکری پر زکوۃ عققائد کققی‬
‫گئی ہے۔ بھینس عرب میں موجود نہ تھی۔ جب مسلمان دوسرے علقوں میں پہنچے تو یہ سققوال پیققدا‬
‫ہوا کہ بھینس پر کس جانور پر قیاس کرتے ہوئے زکوۃ عائد کی جائے۔ اہل علم نے گققائے س قے اس کققی‬
‫مشابہت کی بنیاد پر اس پر اسی شرح سے زکوۃ عائد کی جو گائے کے دین میں مقققرر کققی گئی ہے۔‬
‫اسی طرح قیامت تک مال و دولت کی جو مزید شکلیں پیدا ہوتی رہیققں گققی‪ ،‬انہیققں سققابقہ اشققیا پققر‬
‫قیاس کرتے ہوئے ان پر زکوۃ عائد کی جاتی رہے گی۔‬

‫فقہی علم میں کسی خاص مسئلے کے بارے میں دو صققورتیں ممکققن ہیققں۔ ان میققں‬
‫سے ایک صورت تو اجماع یعنی اتفاق رائے کققی ہے اور دوسققری صققورت اختلف رائے‬
‫کی ہے۔ ان دونوں کی تفصیل اگلے ابواب میں بیان کی گئی ہے۔‬
‫اللہ تعالی کی کتاب کے بارے میں ایک خاص نکتہ یہ ہے کہ اللہ کقی کتقاب عربقوں کقی‬
‫زبان میں نازل ہوئی۔ اس کتاب کے احکام کے بارے میں یہ جاننققا ضققروری ہے کقہ کققون‬
‫سے احکام منسوخ کر دیے گئے اور کن احکام نے انہیں منسوخ کیا؟ اللہ تعققالی ن قے کققن‬
‫چیزوں کو ہم پر لزم یا فرض قرار دیا ہے؟ اس کتاب میں اخلق و آداب کے کیا احکام‬
‫بیان ہوئے ہیں؟ اس کتاب میں کققن چیققزوں کققی طققرف راہنمققائی دی گئی ہے اور کققن‬
‫چیزوں کی اجازت دی گئی ہے؟‬
‫یہ جاننا بھی ضروری ہے کہ اللہ تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو کیققا‬
‫حیثیت اور کیا مرتبہ عطا فرمایا ہے؟ اس نے ایسے کون سے احکام دی قے ہیققں جققن کققی‬
‫وضاحت اس نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ذریعے کروائی ہے؟ اس کققے‬
‫فرض کردہ احکام سے کیا مراد ہے؟ کوئی حکم اس کے بندوں میں سے تمام افراد پققر‬
‫لزم کیا گیا ہے یا صرف چند مخصوص افراد پر؟ اللہ تعالی نے لوگوں پققر اپن قے رسققول‬
‫کی اطاعت میں کیا چیز لزم کی ہے اور کس طرح سے آپ کی طرف رجوع کرنے کا‬
‫حکم دیا ہے؟‬
‫ان مثالوں کا علم بھی ضروری ہے جو اللہ تعالی نے اس لئے بیان کی ہیں کہ گنققاہوں‬
‫سے بچا جائے‪ ،‬دنیا کے معاملت میں لذت اندوز ہونے کے باعث پیدا ہونے والققی غفلققت‬
‫سے پرہیز کیا جائے‪ ،‬اور نوافل کے ذریعے اپنے درجات میں اضافہ کیا جائے۔‬
‫یہ ایک عالم دین کی ذمہ داری ہے کہ وہ صرف اسی معاملے میں اپنی رائے کققا اظ ہار‬
‫کرے جس کے بارے میں اسے پوری طرح یقینی علم حاصل ہو۔ ایسے بہت سے واقعات‬
‫ہیں جن میں اہل علم نے اپنی رائے کا اظہار اس وقت تک نہیں کیققا جققب تققک کقہ انہیققں‬
‫اس کے لئے مجبور نہیں کیا گیا۔ دینی قوانین میقں خاموشقی اور احتیقاط سقلمتی کقے‬
‫زیادہ قریب ہے۔‬

‫‪39‬‬
‫باب ‪ :3‬اسلمی قانون کا علم‬
‫نوٹ‪ :‬اس مقام سے لے کر کتاب کے آخر تک ربیع نے امام شافعی رحمۃ اللہ علیہما ک قے مکققالموں کققو‬
‫سوال جواب کی صورت میں نقل کیا ہے۔ اس ترجمہ میں ہم سوال کرنے والی شخص کققی بققات کققو‬
‫"سائل‪ ":‬اور امام شافعی کے جواب کو "شافعی‪ ":‬کے تحت بیان کریں گے۔‬

‫سائل‪ :‬دینی قانون کا علم کیا ہے اور ایک شخص کو یہ کتنا جاننا چاہیے؟‬
‫شافعی‪ :‬قانونی علم کے دو درجے ہیققں۔ ایققک درجقہ تققو وہ ہے جققو ہر معقققول اور بققالغ‬
‫شخص کے لئے جاننا ضروری ہے۔ یہ علم عام )و خاص( ہر قسم کے افراد کے لئے ہے۔‬
‫سائل‪ :‬کوئی مثال دیجیے۔‬
‫شافعی‪ :‬مثل ً یہ کہ دن میں پانچ نمازیں فرض ہیں۔ روزہ رکھنا اللہ تعالی ن قے فققرض کیققا‬
‫ہے۔ جب بھی ممکن ہو بیت اللہ کا حج کرنا ضروری ہے۔ مال پر زکوۃ دینی چققاہیے۔ اللققہ‬
‫تعالی نے سود‪ ،‬زنا‪ ،‬قتل‪ ،‬چوری‪ ،‬اور شراب سے منع کیا ہے۔ اس معققاملے میققں کققوئی‬
‫اختلف نہیں ہے۔‬
‫یہ وہ احکام ہیں جنہیں سمجھنا‪ ،‬ان پر عمل کرنا‪ ،‬ان پر عمل کرنا‪ ،‬اپنے جان و مال کے‬
‫ذریعے اپنی ذمہ داریوں کو ادا کرنا اور حرام کئے گئے کاموں سقے بچنققا ہر شققخص پققر‬
‫لزم ہے۔ یہ تمام احکام اللہ کی کتاب‪ ،‬واضح نص میں بیان کئے گئے ہیں اور مسلمانوں‬
‫میں ان پر عام طور پر عمل کیا جاتا ہے۔ لققوگ انہیققں نسققل در نسققل )قققولی و عملققی‬
‫تواتر کے ذریعے( منتقل کرتے ہیں اور یہ سلسلہ رسول اللہ صققلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم‬
‫سے چل آ رہا ہے۔ ان احکام کے منتقل کرنے یا ان کی فرضیت میں )امت مسلمہ میققں(‬
‫کوئی اختلف نہیں ہے۔‬
‫یہ وہ علم ہے جس سے متعلق معلومات اور اس کی تشریح ہر طققرح ک قے غلطیققوں‬
‫سے پاک ہے۔ اس میں کسی قسم کا اختلف کرنے کی گنجائش نہیں ہے۔‬
‫سائل‪ :‬دوسری قسم کیا ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬یہ وہ فروعی اور تفصیلی احکام و فرائض ہیں جن کے بارے میں اللہ کی کتاب‬
‫کے متن میں کوئی بات نہیں ملتی اور نہ ہی ان کے بقارے میققں سققنت میققں کققوئی چیقز‬
‫وارد ہوئی ہے۔ جہاں کہیں بھی اس بارے میں کوئی سنت ملتی ہے تو وہ عام لوگوں کی‬
‫بجائے چند اشخاص کے ذریعے ہم تک پہنچتی ہے۔ عقل کے استعمال کے ذریعے اس کققی‬
‫توجیہ )‪ (Interpretation‬کی جا سکتی ہے اور اس میں قیاس سے بھی کام لیا جققا سققکتا‬
‫ہے۔‬
‫سائل‪ :‬کیا اس قسم کے دینی علم پر بھی اسی درجے میں عمل کرنا لزم ہے جیسا کہ‬
‫پہلی قسم کے علم کے سلسلے میں ہے۔ یا پھر لوگوں کے لئے اسے جاننا ضققروری نہیققں‬
‫ہے یا پھر کیا اسے جاننا )فرض کی بجائے( نفل کے درجقے میققں ہہہے؟ جققو شققخص اسقے‬
‫جاننے کی کوشش نہیں کرتا کیا وہ گنہگار تو نہیں ہوتققا؟ یققا پ ھر دینققی علققم کققی کققوئی‬
‫تیسری قسم بھی ہے جسے ہم خبر یا قیاس کے ذریعے حاصل کر سکتے ہیں؟‬
‫شافعی‪ :‬جی ہاں‪ ،‬علم کی ایک تیسری قسم بھی ہے۔‬
‫سائل‪ :‬کیا آپ اس کی وضاحت فرمائیں گے؟ برائے مہربانی اس کا ماخققذ ب ھی بتققائیے‬
‫اور یہ بھی ارشاد فرمائیے کہ اس میں سے کیا چیز فققرض ہے‪ ،‬کققس پققر فققرض ہے اور‬

‫‪40‬‬
‫کس پر فرض نہیں ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬اس قسم کے علم کا حصول عام آدمی کے بس کی بات نہیققں۔ ان علققوم کققو‬
‫حاصل کرنے کے تمام اسپیشلسٹ لوگ بھی مکلف نہیں ہیں لیکن جس شققخص کققو ی قہ‬
‫حاصل ہو جائے وہ اسے نظر انداز نہیں کر سکتا۔ اگر کچھ افراد نے اس علم کو حاصققل‬
‫کر لیا ہے تو دوسرے لوگ پر یہ ذمہ داری نہیں ہے کہ وہ بھی لزما اسے حاصل کریں۔ ہاں‬
‫جن لوگوں نے اس پر محنت کر کے یہ علم حاصل کیا ہے‪ ،‬ان کا درجہ ان س قے بلنققد ہے‬
‫جنہوں نے اسے حاصل نہیں کیا۔‬
‫سائل‪ :‬کیا آپ کوئی نص یا کوئی اور متعلقہ دلیل اس ضققمن میققں بیققان فرمققائیں گ قے‬
‫جسے اس قسم کے علم پر قیاس کیا جائے؟‬
‫شافعی‪ :‬اللہ تعالی نے اپنی کتاب میں جہاد کرنے کا حکم بیان کیا ہے اور ی قہ حکققم اس‬
‫کے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زبان مبارک سے جاری ہوا۔ اللہ تعالی نقے ج ہاد‬
‫کی ذمہ داری کو ادا کرنے کے لئے نکلنے کا حکم اس طرح دیا ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ن َأن ُ‬
‫قققات ُِلو َ‬
‫ن‬ ‫ة يُ َ‬ ‫م ال ْ َ‬
‫جن ّق َ‬ ‫ن ل َهُق ْ‬
‫م ِبقأ ّ‬ ‫وال َهُ ْ‬‫مق َ‬‫م وَأ ْ‬ ‫سه ُ ْ‬
‫ف َ‬ ‫مِني َ‬ ‫مؤْ ِ‬ ‫ن ال ْ ُ‬‫م ْ‬ ‫شت ََرى ِ‬ ‫ها ْ‬ ‫ن الل ّ َ‬ ‫اِ ّ‬
‫ل‬ ‫جي ق ِ‬
‫لن ِ‬ ‫ق قا فِققي الت ّقوَْراةِ َوا ِ‬ ‫ً‬ ‫ح ّ‬ ‫َ‬ ‫ً‬
‫ن وَعْققدا عَلي ْقهِ َ‬ ‫ُ‬
‫قت َلققو َ‬ ‫ن وَي ُ ْ‬ ‫قت ُلو َ‬‫ُ‬ ‫ّ‬
‫ل اللهِ فَي َ ْ‬ ‫سِبي ِ‬‫ِفي َ‬
‫ّ‬ ‫ُ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫َوال ْ ُ‬
‫ه‬
‫م ب ِق ِ‬‫ذي ب َققاي َعْت ُ ْ‬ ‫م ال ق ِ‬ ‫ش قُروا ب ِب َي ْعِك ق ْ‬ ‫ست َب ْ ِ‬ ‫ن الل قهِ َفا ْ‬ ‫م ْ‬ ‫ن أوَْفى ب ِعَهْدِهِ ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ن وَ َ‬ ‫قْرآ ِ‬
‫م۔‬‫ظي ُ‬ ‫فوُْز ال ْعَ ِ‬ ‫ك هُوَ ال ْ َ‬ ‫وَذ َل ِ َ‬
‫حقیقت یہ ہے کہ اللہ نے مومنوں سے ان کے جان و مال جنت کے بدلے خرید لئے ہیں۔ وہ‬
‫اللہ کی راہ میں لڑتے ہیں اور مرتقے اور مققارتے ہیققں۔ ان سقے جنققت کققا وعققدہ تققورات‪،‬‬
‫انجیل اور قرآن میں اللہ کی طرف سے حق ہے اور اللہ سے بڑھ کر کون ہے جققو اپنققا‬
‫عہد پورا کرنے وال ہو۔ پس خوشیاں مناؤ اپنے اس سودے پر جو تم نے خققدا س قے چکققا‬
‫لیا ہے۔ یہی بڑی کامیابی ہے۔ )توبہ ‪(9:111‬‬
‫َ‬
‫ن۔‬
‫قي َ‬ ‫معَ ال ْ ُ‬
‫مت ّ ِ‬ ‫ن الل ّ َ‬
‫ه َ‬ ‫ة َواعْل َ ُ‬
‫موا أ ّ‬ ‫قات ُِلون َك ُ ْ‬
‫م َ‬
‫كافّ ً‬ ‫ة كَ َ‬
‫ما ي ُ َ‬ ‫ن َ‬
‫كافّ ً‬ ‫كي َ‬ ‫وََقات ُِلوا ال ْ ُ‬
‫م ْ‬
‫شرِ ِ‬
‫ان مشرکین سے مل کر لڑو جیسا کہ وہ تم سے مل کر لڑتے ہیں اور جققان لققو ک قہ الل قہ‬
‫متقیوں کے ساتھ ہی ہے۔ )توبہ ‪(9:36‬‬
‫ل‬‫م كُ ّ‬‫دوا ل َهُ ْ‬ ‫م َواقْعُ ُ‬ ‫صُروهُ ْ‬ ‫ح ُ‬
‫م َوا ْ‬
‫ذوهُ ْ‬‫خ ُ‬
‫م وَ ُ‬‫موهُ ْ‬ ‫جد ْت ُ ُ‬
‫ث وَ َ‬
‫حي ْ ُ‬
‫ن َ‬ ‫كي َ‬
‫شرِ ِ‬ ‫م ْ‬‫َفاقْت ُُلوا ال ْ ُ‬
‫َ‬
‫ه غَ ُ‬
‫فققوٌر‬ ‫ن الل ّق َ‬‫م إِ ّ‬‫سِبيل َهُ ْ‬
‫خّلوا َ‬ ‫وا الّز َ‬
‫كاةَ فَ َ‬ ‫صلةَ َوآت َ ْ‬ ‫موا ال ّ‬‫ن َتاُبوا وَأَقا ُ‬‫صدٍ فَإ ِ ْ‬‫مْر َ‬ ‫َ‬
‫م۔‬‫حي ٌ‬ ‫َر ِ‬
‫جہاں پاؤ مشرکین کو قتل کرو‪ ،‬اور انہیں پکڑو اور گھیرو اور ہر گ ھات میققں ان کققی‬
‫خبر لینے کے لئے بیٹھو۔ پھر اگر وہ توبہ کر لیں‪ ،‬نماز قائم کریں اور زکوۃ دیں تو ان کققا‬
‫راستہ چھوڑ دو۔ بے شک اللہ درگزر کرنے وال اور رحم کرنے وال ہے۔ )توبہ ‪(9:5‬‬
‫ه‬‫م الل ّق ُ‬‫ح قّر َ‬‫مققا َ‬
‫ن َ‬ ‫مققو َ‬
‫حّر ُ‬
‫خ قرِ َول ي ُ َ‬ ‫ن ِبالل ّهِ َول ب ِققال ْي َوْم ِ ال ِ‬‫مُنو َ‬‫ن ل ي ُؤْ ِ‬ ‫ذي َ‬‫َقات ُِلوا ال ّ ِ‬
‫ُ‬
‫ة‬
‫جْزَيقق َ‬ ‫طوا ال ْ ِ‬‫حّتى ي ُعْ ُ‬‫ب َ‬ ‫ن أوُتوا ال ْك َِتا َ‬‫ذي َ‬‫ن ال ّ ِ‬ ‫م ْ‬ ‫حق ّ ِ‬‫ن ال ْ َ‬‫ن ِدي َ‬‫ديُنو َ‬ ‫ه َول ي َ ِ‬ ‫سول ُ ُ‬
‫وََر ُ‬
‫ن۔‬ ‫صاِغُرو َ‬ ‫م َ‬ ‫ن ي َدٍ وَهُ ْ‬ ‫عَ ْ‬
‫جنگ کرو ان اہل کتاب سے جو اللہ اور آخرت کے دن پر ایمان نہیققں لت قے اور جققو الل قہ‬
‫اور اس کے رسول نے حرام کیا ہے اسے حرام نہیں کرتے اور اور دین حق کو اپنا دیققن‬
‫نہیں بناتے۔ ان سے اس وقت تک جنگ کرو یہاں تک کہ وہ اپنے ہاتھ سقے جزیقہ دیققں اور‬
‫چھوٹے بن کر رہیں۔ )توبہ ‪(9:29‬‬
‫شافعی‪) :‬یہ حدیث بھی ہے۔(‬
‫عبدالعزیز بن محمد الدراداوردی روایت کرتے ہیں محمد بققن عمققرو بققن علقم قہ اور وہ‬
‫ابو سلمہ سے اور وہ ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم‬

‫‪41‬‬
‫نے ارشاد فرمایا‪ :‬میں اس وقت تک ان مشرکین سے جنگ کروں گا جققب تققک وہ اس‬
‫بات کا اقرار نہ کر لیں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں ہے۔ اگر وہ اس بات کو تسققلیم‬
‫کر لیں تو انہوں نے اپنی جان و مال کو محفوظ کر لیا سققوائے اس ک قے ک قہ انہیققں اس‬
‫کی قیمت دی جائے اور ان کا اجر اللہ تعالی عطا کرے گا۔ )سنن ابو داؤد(‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫م إ ِل َققى‬ ‫َ‬
‫ل الل ّقهِ اث ّققاقَل ْت ُ ْ‬ ‫سِبي ِ‬ ‫فُروا ِفي َ‬ ‫م ان ِ‬‫ل ل َك ُ ْ‬ ‫ذا ِقي َ‬ ‫م إِ َ‬ ‫ما ل َك ُ ْ‬ ‫مُنوا َ‬ ‫نآ َ‬ ‫ذي َ‬ ‫َيا أي َّها ال ّ ِ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫ة‬
‫خققَر ِ‬ ‫حَياةِ الد ّن َْيا ِفي ال ِ‬ ‫مَتاعُ ال ْ َ‬
‫ما َ‬ ‫خَرةِ فَ َ‬ ‫ن ال ِ‬ ‫م ْ‬‫حَياةِ الد ّن َْيا ِ‬ ‫م ِبال ْ َ‬ ‫ضيت ُ ْ‬‫ض أَر ِ‬ ‫الْر ِ‬
‫َ‬
‫ض قّروهُ‬ ‫م َول ت َ ُ‬ ‫وم قا ً غَي َْرك ُق ْ‬ ‫ل قَ ْ‬ ‫ذابا ً أِليما ً وَي َ ْ‬
‫س قت َب ْدِ ْ‬ ‫م عَ َ‬ ‫فُروا ي ُعَذ ّب ْك ُ ْ‬ ‫ل۔ إ ِل ّ َتن ِ‬ ‫إ ِل ّ قَِلي ٌ‬
‫ديٌر ۔‬‫يٍء قَ ِ‬ ‫ش ْ‬ ‫ل َ‬ ‫ه عَلى ك ُ ّ‬ ‫َ‬ ‫شْيئا ً َوالل ُ‬
‫ّ‬ ‫َ‬
‫اے ایمان والو! تمہیں کیا ہو گیا ہے کہ جب تم سے اللہ کی راہ میں نکلنے کے لئے کہا گیا‬
‫تو تم زمین سے چمٹ کر رہ گئے؟ کیا تققم نقے آخقرت کققی زنققدگی کقے بقدلے دنیقا کققی‬
‫زندگی کو پسند کر لیا؟ ایسا ہے تو تمہیں معلوم ہونا چاہیے کہ دنیققا کققی زنققدگی کققا ی قہ‬
‫سامان آخرت میں بہت ہی کم نکلے گا۔ تم نہ اٹھو گے تو اللہ تمہیققں درد نققاک سققزا دے‬
‫گا اور تمہاری جگہ کسی اور گروہ کو اٹھائے گا اور تم اس کقا کچقھ نقہ بگقاڑ سقکو گقے‬
‫کیونکہ اللہ ہر چیز پر قدرت رکھتا ہے۔ )توبہ ‪( 39-9:38‬‬
‫م وََأن ُ‬ ‫َ‬
‫خْيققٌر‬ ‫ل الل ّهِ ذ َل ِك ُ ْ‬
‫م َ‬ ‫سِبي ِ‬ ‫سك ُ ْ‬
‫م ِفي َ‬ ‫ف ِ‬ ‫وال ِك ُ ْ‬
‫م َ‬
‫دوا ب ِأ ْ‬ ‫قال ً وَ َ‬
‫جاهِ ُ‬ ‫فافا ً وَث ِ َ‬ ‫خ َ‬‫فُروا ِ‬ ‫ان ِ‬
‫ن۔‬‫مو َ‬ ‫م ت َعْل َ ُ‬ ‫ن ُ‬
‫كنت ُ ْ‬ ‫ل َك ُ ْ‬
‫م إِ ْ‬
‫)جہاد کے لئے نکلو( خواہ ہلکے ہو یا بوجھل۔ اور جہاد کرو اللہ کی راہ میققں اپن قے مققالوں‬
‫اور جانوں کے ساتھ۔ یہ تمہارے لئے بہتر ہے اگر تم جانو۔ )توبہ ‪( 9:41‬‬
‫ان آیات سے ایک تو اس معنی کا احتمال ہے کہ جہاد اور اللہ کی راہ میں مسلح ہو کققر‬
‫نکلنا‪ ،‬ہر اس صاحب ایمان پر فرض ہے جو جسمانی طققور پققر اس ک قے قابققل ہو۔ اس‬
‫سے کسی کو استثنا حاصل نہیں ہے۔ یہ حکم ایسا ہی ہے جیسا ک قہ نمققاز‪ ،‬زکققوۃ اور حققج‬
‫فرض ہے۔ کوئی شخص دوسرے کی جگہ ی قہ فریض قہ انجققام نہیققں دے سققکتا کیققونکہ ایققک‬
‫شخص کی ادائیگی سے دوسرا شخص بری الذمہ نہیں ہو جاتا۔‬
‫دوسرا احتمال یہ بھی ہے کہ جہاد ایک اجتماعی فرض ہے جقو کقہ نمقاز کقی طققرح ہر‬
‫شخص پر فردا ً فردا ً لزم نہیں ہے۔ یہ فرض کفایہ ہے۔ جن افراد نے مشققرکین کقے خلف‬
‫جہاد کیا‪ ،‬انہوں نے دوسروں کا فرض بھی ادا کر دیا لیکققن ان کققا درج قہ اور اجققر کہیققں‬
‫زیادہ ہو گا کیونکہ انہوں نے پیچھے رہ جانے والوں کو بھی )جہاد نہ کرنے کے( گناہ سے بچا‬
‫لیا۔‬
‫ُ‬
‫ن فِققي‬ ‫دو َ‬ ‫جاهِق ُ‬ ‫م َ‬ ‫ضقَررِ َوال ْ ُ‬ ‫ن غَي ْقُر أوْل ِققي ال ّ‬ ‫َ‬ ‫مِني‬ ‫مقؤْ ِ‬ ‫ن ال ْ ُ‬ ‫ْ‬ ‫مق‬ ‫ن ِ‬ ‫دو َ‬ ‫عق ُ‬ ‫قا ِ‬ ‫وي ال ْ َ‬ ‫ست َ ِ‬ ‫ل يَ ْ‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬
‫م‬
‫س قه ِ ْ‬
‫ف ِ‬ ‫م وَأن ُ‬ ‫وال ِهِ ْ‬
‫م َ‬ ‫ن ب ِقأ ْ‬ ‫دي َ‬ ‫جاهِق ِ‬ ‫م َ‬
‫ه ال ُ‬ ‫ل الل ق ُ‬ ‫ض َ‬ ‫م فَ ّ‬ ‫سه ِ ْ‬ ‫ف ِ‬ ‫م وَأن ُ‬ ‫وال ِهِ ْ‬‫م َ‬
‫ل اللهِ ب ِأ ْ‬ ‫سِبي ِ‬ ‫َ‬
‫ن عَل َققى‬ ‫دي‬ ‫ق‬
‫ُ ُ َ ِ ِ َ‬‫ه‬ ‫جا‬ ‫م‬ ‫ْ‬ ‫ل‬‫ا‬ ‫ه‬ ‫ّ‬ ‫ل‬‫ال‬ ‫َ‬
‫ل‬ ‫ض‬
‫َ ّ‬‫َ‬ ‫ف‬ ‫و‬ ‫نى‬ ‫س‬
‫ُ ْ َ‬ ‫ح‬‫ْ‬ ‫ل‬ ‫ا‬ ‫ه‬
‫ُ‬ ‫ّ‬ ‫ل‬ ‫ال‬ ‫د‬
‫َ َ‬ ‫َ‬ ‫ع‬‫و‬ ‫ّ‬ ‫ل‬ ‫ُ‬ ‫ك‬ ‫و‬ ‫ة‬
‫ً‬ ‫ج‬
‫ِ َ ََ َ َ‬ ‫ر‬ ‫د‬ ‫ن‬ ‫دي‬ ‫ع‬
‫ِ‬ ‫قا‬
‫َ‬ ‫ْ‬ ‫ل‬ ‫ا‬ ‫لى‬ ‫َ‬ ‫عَ‬
‫َ‬
‫ظيما ۔‬ ‫جرا ً عَ ِ‬ ‫نأ ْ‬ ‫دي َ‬ ‫ع ِ‬ ‫ال ْ َ‬
‫قا ِ‬
‫مومنوں میں سے وہ جو بغیر کسی عذر کے گھر بیٹھے رہتے ہیں اور وہ جو الل قہ کققی راہ‬
‫میں جان و مال کے ساتھ جہاد کرتے ہیں‪ ،‬دونوں کی حیثیت یکسقاں نہیققں ہے۔ اللقہ نقے‬
‫بیٹھنے والوں کی نسبت جہاد کرنے والوں کا درجہ بڑا کر رکھا ہے۔ اگرچقہ ہر ایقک کقے‬
‫لئے اللہ نے بھلئی ہی کا وعدہ کر رکھا ہے مگر اس کے ہاں مجا ہدوں کققی خققدمات کقا‬
‫بدلہ بیٹھے رہ جانے والوں کی نسبت بہت زیادہ ہے۔ )النساء ‪( 4:95‬‬
‫اگرچہ ان آیات کے الفاظ سے بظاہر یہ معلوم ہوتا ہے کقہ یقہ ذمقہ داری سققب لوگققوں پققر‬
‫فرض ہے )لیکن جہاد دراصل فرض کفایہ ہے۔(‬
‫سائل‪ :‬آپ کے اس نقطہ نظر کی کیا دلیل ہے کہ اگر کچھ افققراد اس فققرض کققو ادا کققر‬

‫‪42‬‬
‫دیں تو باقی سب کی طرف سے بھی یہ ذمہ داری ادا ہو جاتی ہے اور وہ گنہگار ن قہ ہوں‬
‫گے؟‬
‫شافعی‪ :‬یہ اسی آیت میں ہے جو میں نے آپ کے سامنے بیان کی۔‬
‫سائل‪ :‬اس کے کون سے حصے میں؟‬
‫سقَنى" یعنققی‬ ‫ه ال ْ ُ‬
‫ح ْ‬ ‫شافعی‪ :‬اس حصے میں جس میں اللہ تعالی نے فرمایا وَك ُل ّ وَعَد َ الل ّق ُ‬
‫"ہر ایک کے لئے اللہ نے بھلئی کا وعدہ کیا ہے۔" اللہ تعالی نے بھلئی کققا وعققدہ ان لوگققوں س قے‬
‫بھی کیا ہے جو جہاد پر نہ جا سکے اور پیچھے رہ گئے البتہ یہ واضح طور پر فرما دیققا گیققا‬
‫ہے کہ جہاد کرنے والوں کا درجہ اور فضیلت زیادہ ہہہے۔ اگققر پیچھہہے رہ جققانے وال قے‪ ،‬لڑنقے‬
‫والوں کی نسبت غلطی پر ہوتے‪ ،‬تو لزما ً وہ گناہ کر رہے ہوتے۔ انہیں اللہ تعققالی "بھلئی‬
‫کے وعدہ" کی بجائے انہیں سزا دینے یا معاف کر دینے کی بات کرتا۔‬
‫سائل‪ :‬کیا کوئی اور دلیل بھی ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬جی ہاں‪ ،‬اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫ة‬
‫فق ٌ‬ ‫م َ‬
‫طائ ِ َ‬ ‫ل فِْرقَ قةٍ ِ‬
‫من ْهُ ق ْ‬ ‫ن ك ُق ّ‬‫مق ْ‬ ‫ف قَر ِ‬
‫ول ن َ َ‬ ‫ة فَل َق ْ‬ ‫فُروا َ‬
‫كافّ ً‬ ‫ن ل َِين ِ‬
‫مُنو َ‬ ‫ن ال ْ ُ‬
‫مؤْ ِ‬ ‫ما َ‬
‫كا َ‬ ‫وَ َ‬
‫حذ َُرو َ‬
‫ن۔‬ ‫م يَ ْ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬
‫م لعَلهُ ْ‬ ‫َ‬
‫جُعوا إ ِلي ْهِ ْ‬
‫ذا َر َ‬ ‫م إِ َ‬ ‫ن وَل ُِينذُِروا قَوْ َ‬
‫مه ُ ْ‬ ‫دي ِ‬
‫قُهوا ِفي ال ّ‬ ‫ف ّ‬
‫ل ِي َت َ َ‬
‫اور یہ مومنوں پر لزم نہیں ہے کہ وہ سب کے سب نکل کھڑے ہوں مگر ایسققا کیققوں ن قہ‬
‫ہوا کہ ان کی آبادی کے ہر حصے سے کچھ لوگ نکل کر آتقے اور دیققن کققی سققمجھ پیققدا‬
‫کرتے اور واپس جا کر اپنے علقوں کے باشندوں کو خبردار کرتقے تقا کقہ وہ )نافرمقانی‬
‫سے( پرہیز کریں۔ )توبہ ‪( 9:122‬‬
‫جب اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم متعدد غزوات پققر تشققریف لقے گئے تققو آپ‬
‫کے ساتھ کچھ صحابہ رضی اللہ عنہم تھے جبکہ ایسے صحابہ بھی تھے جققو پیچ ھے رہ گئے۔‬
‫مثال کے طور پر سیدنا علی بن ابی طالب رضققی اللقہ عنقہ غققزوہ تبققوک کقے موقققع پققر‬
‫پیچھے رہ گئے۔ اللہ تعالی نے یہ ذمہ داری تمام مسلمانوں پر عائد نہیں کی کہ وہ جنگ پر‬
‫ة" یعنققی "تققو ایسققا‬
‫ف ٌ‬ ‫م َ‬
‫طائ ِ َ‬ ‫من ْهُ ْ‬ ‫ن كُ ّ‬
‫ل فِْرقَةٍ ِ‬ ‫م ْ‬
‫فَر ِ‬ ‫جائیں۔ جیسا کہ اس نے فرمایا‪ " ،‬فَل َ ْ‬
‫ول ن َ َ‬
‫کیوں نہ ہوا کہ ان میں سے ایک گروہ ہر آبادی سے نکلتا؟" اس سے یہ معلوم ہوا کہ جنگ کے لئے‬
‫جانا چند لوگوں کے لئے لزم تھا نہ کہ سب کے لئے۔ یہ بالکققل اسققی طققرح ہے جیسققا کقہ‬
‫)دینی علوم میں( مہارت اور سمجھ بوجھ حاصل کرنا سب پر لزم نہیں ہے بلک قہ بعققض‬
‫لوگوں پر لزم ہے۔ یہ فرائض جن کا جاننا ہر شخص کے لئے ضروری ہے‪ ،‬ان کققا معققاملہ‬
‫ایسا نہیں ہے۔‬
‫اسی طرح دیگر احکام بھی ہیں جن کی ادائیگی اجتماعی طور پر ضروری ہے۔ جب‬
‫انہیں مسلمانوں کا ایک گروہ ادا کر دے گا تو باقی لوگ گناہ گار نہ ہوں گ قے۔ اگققر تمققام‬
‫کے تمام لوگ ہی انہیں ادا نہ کریں تو پھر مجھے ڈر ہے کہ وہ سب گناہ گار ہوں گے لیکققن‬
‫ایسا ہونا ناممکن ہے کیونکہ اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ذابا ً أ َِليما ً ۔‬ ‫فُروا ي ُعَذ ّب ْك ُ ْ‬
‫م عَ َ‬ ‫إ ِل ّ َتن ِ‬
‫تم نہ نکلو گے تو اللہ تمہیں درد ناک سزا دے گا ۔ )توبہ ‪( 9:39‬‬
‫سائل‪ :‬اس آیت کا کیا مطلب ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬اس کا مطلب یہ ہے کہ اس بات کی اجازت نہیں کہ تمققام کقے تمقام افقراد ہی‬
‫جہاد کے لئے نہ نکلیں۔ لیکن اگر کافی تعداد میں لوگ جہاد کے لئے نکل کھڑے ہوتے ہیققں‬
‫اور اس اجتماعی فریضے کو ادا کرتے ہیں تو پھر باقی لوگ گناہ گار ہونے سے بچ جققاتے‬

‫‪43‬‬
‫ہیں )کیونکہ جانے والوں نے پیچھے رہ جانے والوں کققا فققرض بھہہی ادا کققر دیققا۔( جققب ان‬
‫میں سے )کافی تعداد میں( کچھ لوگ نکل کھڑے ہوئے تو اس پر لفظ "نفیر" کققا اطلق‬
‫ہو جائے گا۔‬
‫سائل‪ :‬کیا جہاد کے علوہ بھی کوئی اور مثال ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬جی ہاں۔ نماز جنازہ اور مردے کو دفن کرنے ہی کقو لیجیقے جسقے تقرک کرنقا‬
‫درست نہیں۔ تمام مسلمانوں کی یہ ذمہ داری نہیں کہ وہ اسے ادا کرن قے ک قے لئے جنققازے‬
‫میں لزمی آئیں۔ اگر کافی تعداد میں لوگ اسے ادا کرتے ہیں تو وہ دوسرے لوگوں کققو‬
‫بھی گناہ سے بچا لیتے ہیں۔ اسی طریقے سے سلم کا جواب دینا ب ھی اسققی کققی ایققک‬
‫مثال ہے۔ اللہ تعالی نے فرمایا‪:‬‬
‫ن عََلى ك ُ ّ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫يٍء‬ ‫ل َ‬
‫شقق ْ‬ ‫كا َ‬ ‫ن الل ّ َ‬
‫ه َ‬ ‫ها إ ِ ّ‬
‫دو َ‬
‫من َْها أوْ ُر ّ‬
‫ن ِ‬
‫س َ‬
‫ح َ‬ ‫حي ّةٍ فَ َ‬
‫حّيوا ب ِأ ْ‬ ‫م ب ِت َ ِ‬
‫حّييت ُ ْ‬
‫ذا ُ‬‫وَإ ِ َ‬
‫سيبا ۔ً‬
‫ح ِ‬ ‫َ‬
‫جب کوئی احترام سے تمہیں سلم کرے تو تم اس کو بہتر طریقے سے جواب دو یا کم‬
‫از کم اسی طرح کا جواب تو دو۔ بے شک اللہ ہر چیز کا حساب لین قے وال ہے۔ )النسققا‬
‫‪( 4:86‬‬
‫اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪:‬‬
‫کھڑے لوگ بیٹھوں کو سلم کریں۔ اگر کوئی ایک شخص بھی سلم کققا جققواب دے دے‬
‫تو وہ باقی سب کی ذمہ داری کو ادا کر دیتا ہے۔ )موطا امام مالک‪ ،‬سنن ابی داؤد(‬
‫اس کا مقصد یہ ہے کہ جواب دینا ضروری ہے۔ چند لوگوں کا جواب دوسرے لوگوں سے‬
‫جواب دینے کی ذمہ داری کو ادا کر دے گی کیونکہ یہی کافی ہے۔‬
‫جہاں تک مجھے علم ہے‪ ،‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمققانے سقے لقے کققر‬
‫آج تک مسلمانوں کا عمل بھی اسی طرح ہے جیسا کہ میں نقے بیققان کیققا۔ صققرف چنققد‬
‫لوگوں ہی دینی علوم میں تفصیلی سمجھ پیدا کرتے ہیں‪ ،‬نماز جنازہ بعض لوگ ہی ادا‬
‫کرتے ہیں‪ ،‬جہاد بھی بعض لوگ ہی کرتے ہیں‪ ،‬سلم کا جواب بھی بعض لققوگ ہی دیتقے‬
‫ہیں۔ اگرچہ یہ ادائیگی کرنے والے باقی لوگوں سے مختلف ہیں۔ وہ یہ جانتے ہیں کققہ دیققن‬
‫کی سمجھ بوجھ پیدا کرنے والے‪ ،‬جہاد کرنے وال قے‪ ،‬جنققازے میققں حاضققر ہونے وال قے‪ ،‬اور‬
‫سلم کا جواب دینے والے زیادہ اجر کے مستحق ہیں۔ جو ایسا نہیں کرے گا وہ گناہ گار نہ‬
‫ہو گا اگر کافی لوگوں کی تعداد یہ اجتماعی فریضہ انجام دے چکی ہو۔‬

‫‪44‬‬
‫حصصصصصصص ہ دوم‪:‬‬
‫کتاب الل ہ‬
‫یہ حصہ کتاب اللہ سے متعلق اصولوں کی وضاحت پر مشتمل ہے۔ اس حصے میں امققام‬
‫شافعی نے یہ اصول بیان کیے ہیں‪:‬‬
‫• قرآن مجید خالصتا ً عربی زبان میں نازل ہوا۔ یہ زبان اپنے ابتدائی مخاطبین کے‬
‫لئے بالکل واضح تھی۔‬
‫• جو شخص قرآن کو براہ راست سمجھنا چاہے‪ ،‬اس کے لئے لزم ہے کہ وہ رسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے دور میں آپ کی ققوم یعنققی ا ہل مکقہ )قریقش(‬
‫کی زبان سیکھے کیونکہ زمانے اور علقے کے فرق سے زبانوں میں تبدیلیاں واقع‬
‫ہو جاتی ہیں۔ یہ مخصوص عربی زبان سیکھے بغیر قرآن کو براہ راست سققمجھنا‬
‫درست نہیں۔‬
‫• قرآن میں بعض احکام عمومی اور ابدی نوعیت کے ہیں جن پر عمل کرنا تمام‬
‫مسلمانوں کے لئے لزم ہے اور بعض احکام خصوصققی نققوعیت ک قے ہیققں جققن پققر‬
‫عمل کرنا مخصوص صورتحال ہی میں لزم ہے۔ ان دونوں میں فققرق کرنققا ب ہت‬
‫ضروری ہے۔ بعض احکام ایسے ہوتے ہیں جو عمومی الفاظ میں بیان کیے جققاتے‬
‫ہیں لیکن ان سے مراد کوئی خصوصی صققورتحال ہ ہوتی ہہہے۔ اسققی طققرح بعققض‬
‫احکام خصوصی ہوتے ہیں اور اس کی وضاحت سنت سے ہوتی ہے۔‬
‫• قرآن کے ناسخ و منسوخ احکام کا تعین کرنا بہت ضروری ہے۔‬
‫• سنت سے قرآن کے کسی حکم کو منسوخ نہیں کیا جا سکتا۔ سققنت قققرآن کقے‬
‫تابع رہ کر اس کی وضاحت کرتی ہے۔‬

‫‪45‬‬
‫باب ‪ :4‬قرآن کی زبان‬
‫سائل‪ :‬کیا قرآن میں عربی کے علوہ دوسری زبانوں کے )عجمی( الفاظ بھی ہیں؟‬
‫شافعی‪ :‬قرآن یہ بیان کرتا ہے کہ اس میں اللہ کی کتاب میں سوائے عربی زبان کے اور‬
‫کسی زبان کے الفاظ استعمال نہیں کئے گئے۔ جس کسی نے بھی یہ رائے بیقان کقی ہے‬
‫کہ قرآن میں عجمی الفاظ بھی ہیں‪ ،‬اس نے ایسا کچھ اور لوگوں کو یہ کہتے ہوئے سققنا‬
‫اور وہ اس نے ان کی اندھا دھنققد تقلیققد شققروع کققر دی۔ اس نقے ثبققوت کققا معققاملہ اس‬
‫شخص پر اور اس سے اختلف کرنے والے پر چھوڑ دیا۔ انققدھی تقلیققد س قے ایققک غافققل‬
‫انسان )اپنے فرض سے( مزید غافقل ہو جایقا کرتقا ہے۔ اللقہ تعقالی ان کقی اور ہمقاری‬
‫مغفرت کرے۔‬
‫جو شخص یہ رائے رکھتا ہے اور وہ جو اس رائے کو مانتے ہیں وہ یہ کہتے ہیں ک قہ قققرآن‬
‫میں کچھ غیر عربی الفاظ ہیں جو خود عربوں کی سمجھ میں نہیں آت قے۔ عربققی زبققان‬
‫تو تمام زبانوں میں سب سے وسیع لغت )‪ (Vocabulary‬کی حامل ہے۔ کیا ہم سققوائے‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے کسی اور کققو جققانتے ہیققں جققس نقے اس پققوری‬
‫لغت کا احاطہ کر لیا ہو؟ اس زبان میں سے کوئی ایسی بات نہیں جو ضائع ہو چکققی )‬
‫‪ (Missing‬ہو اور اس کا کوئی عالم دنیا میں موجود نہ ہو۔‬
‫عرب‪ ،‬عربی زبان سے اسی طرح واقف ہیں جیسا کہ اہل فقہ )‪ (Jurists‬قققانون سققے‬
‫واقف ہیں۔ کیا ایسا کوئی شخص ہو گا جو تمام سققنتوں )احققادیث( کققا عققالم ہو۔ اگققر‬
‫تمام علماء کا علم ایک جگہ جمع کر لیا جائے تو تمام احققادیث معلققوم ہو جققائیں گققی۔‬
‫اگرچہ ہر عالم کا علقم اگقر علیحقدہ رک ھا جقائے تقو اس میققں کچقھ علقم یقینقا ً غقائب )‬
‫‪ (Missing‬ہو گا۔ یہ غائب علم کسی دوسرے عالم کے ہاں مل سکتا ہے۔‬
‫ان اہل علم کے بھی متعدد درجات ہیں‪ :‬ان میں وہ ب ھی ہیقں جقو احقادیث کقے زیقادہ‬
‫حصے کا علم رکھتے ہیں اگرچہ بعض احادیث ان کے علم میں نہ ہوں۔ )دوسققرے طبق قے‬
‫میں( ایسے اہل علم شامل ہیں جو پہلے درجے کے اہل علم کی نسبت کم علققم رکھتققے‬
‫ہیں۔‬
‫ان چند قلیل احادیث کو‪ ،‬جن کا علم پہلے طبقے کے کسی عالم کو نہیں ہے‪ ،‬حاصققل‬
‫کرنے کے لئے ہم دوسرے طبقے کے عالم کے پاس نہیں جقائیں گقے۔ اس کقی بجقائے جقو‬
‫کچھ اس عالم کو معلوم نہیں ہے‪ ،‬اسی کقے طبققے سقے تعلققق رکھنقے والقے کسققی اور‬
‫عالم کے پاس جا کر معلوم کر سکتے ہیں اور اس طریقے سے رسققول الل قہ صققلی الل قہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم‪ ،‬میرے ماں باپ آپ پر قربان‪ ،‬کی تمام احادیث کو اکٹھا کر سکتے ہیققں‬
‫جو اس وقت علماء کے پاس علیحدہ علیحدہ موجود ہیں۔ اہل علققم ک قے ی قہ درجققات اس‬
‫بنیاد پر ہیں کہ کس نے حدیث کا کتنا علم حاصل کیا ہے۔‬
‫نوٹ‪ :‬امام شافعی نے اپنے زمانے کی صورت حال سے یہ مثال بیان کققی ہے جققب احققادیث کققو پققوری‬
‫طرح مدون نہیں کیا گیا تھا۔ ان کے بعد محدثین نے اپنی پوری پوری عمریں صرف کر کے ان احادیث‬
‫کو اکٹھا کر کے ان کی تدوین کی۔ احادیث کے پھیلے ہوئے ذخیرے کو اکٹھا کیا گیا اور ان کے ثبوت کی‬
‫بنیاد پر ان کی درجہ بندی کی گئی۔ احادیث کی چھان بین کے لئے اصول حدیث کے فن کو ترقققی دی‬
‫گئی۔ حدیث بیان کرنے والے تمام افراد کے کوائف جمع کئے گئے اور ان کقے قابققل اعتمققاد ہونے یققا نقہ‬
‫ہونے کا تعین کیا گیا۔‬
‫احادیث کا پورا ذخیرہ اب دنیا بھر میں شائع ہو چکا ہے اور اس میں شامل احادیث کقے بققارے میقں‬

‫‪46‬‬
‫متعین ہو چکا ہے کہ کون سی حدیث مستند ہے اور کون سی حدیث مستند نہیں ہے۔ حدیث کققی تمققام‬
‫کتب نہ صرف پرنٹڈ شکل میں بلکہ سافٹ ویئر کی صورت میں اب دستیاب ہیققں۔ ن قہ صققرف احققادیث‬
‫بلکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے دور کے کلم عرب کا بھی یہی معاملہ ہے۔ عربی زبان اور‬
‫اس کے ادب کو بھی محفوظ کر کے کتب اور سافٹ ویئر کی شکل میں شائع کر دیا گیا ہے۔‬

‫بالکل یہی معاملہ )قرآن کے نزول کے زمانے میں لکھی اور بولی جانے والی( عربققی‬
‫زبان کے علماء اور عام لوگوں کا بھی ہے۔ اس کا کوئی حصہ ایسا نہیں ہے جو ضائع ہو‬
‫چکا ہو اور کسی بھی شخص کے علم میں نہ ہو۔ اس کے معققاملے میققں ہمیققں دوسققرے‬
‫)غیر عرب( لوگوں کے پاس جانے کی ضرورت نہیں ہے۔ لزما ً ہر شخص کققو اس قے ا ہل‬
‫عرب ہی سے سیکھنا ہو گا اور کوئی بھی اس زبان میں اس وقققت تققک رواں نہیققں ہو‬
‫سکتا جب تک وہ اہل زبان کے طریقے کی پیروی نہ کرے۔ جن لوگوں نے اس سققے پہلققے‬
‫اس زبان کو سیکھا ہے وہ اہل زبان ہی تو ہیں۔‬
‫جن لوگوں نے عربی کو چھوڑ کر دوسری زبانیں اختیار کر لی ہیں‪ ،‬ان ہوں ن قے ایسققا‬
‫اس لئے کیا ہے کہ انہوں نے اس زبان کو نظر انداز کر دیا۔ اگر وہ دوبارہ اس زبققان کققی‬
‫طرف لوٹ آئیں تو ان کا شمار بھی اہل زبان ہی میں ہونے لگقے گققا۔ عربققی زبققان کققا‬
‫علم اہل عرب میں اسی طرح عام پھیل ہوا ہے جیسا کہ احققادیث کققا علققم‪ ،‬حققدیث ک قے‬
‫علماء )محدثین( میں پھیل ہوا ہے۔‬
‫سائل‪ :‬کیا ہم ایسے عجمی لوگوں کو نہیں دیکھتے ہیں جو عربی زبققان میققں کچقھ بققات‬
‫کر لیتے ہیں؟‬
‫شافعی‪ :‬اس کی وضاحت اس طرح سے کی جققا سققکتی ہے‪ ،‬جیسققا کقہ میقں نقے پہلقے‬
‫عرض کیا کہ انہوں نے اس زبان کو اہل عرب سے سیکھا ہے ورنہ کوئی بھی چند الفققاظ‬
‫سے زیادہ بول ہی نہیں سکتا۔ جو شخص عربی میں کچ قھ بققات کققر سققکتا ہے‪ ،‬اس ن قے‬
‫ایسا عربوں سے سیکھ کر ہی کیا ہو گا۔ ہم اس بات کا انکار نہیں کرتے کقہ غیققر ملکققی‬
‫زبانوں میں کچھ عربی الفاظ سیکھ کر یا ویسے ہی داخل کئے جا سکتے ہیں جققس ک قے‬
‫باعث عجمی زبان کا کچھ حصہ عربی کی طرح ہو جاتا ہے۔‬
‫یہ اسی طرح کا معاملہ ہے جیسا کہ دو مختلف عجمی زبانوں میں ب ھی ت ھوڑے س قے‬
‫الفاظ اور اسالیب مشترک ہو سکتے ہیں۔اس کے باوجود یہ زبانیں مختلف ممالک میققں‬
‫بولی جاتی ہیں اور ان الفاظ کے مشترک ہونے کے باوجود یہ زبانیں ایققک دوسققرے س قے‬
‫بالکل مختلف اور غیر متعلق سمجھی جاتی ہیں۔‬
‫سائل‪ :‬اس بات کی کیا دلیل ہے کہ اللہ تعالی کی کتاب خالصتا ً عربی زبققان میققں نققازل‬
‫ہوئی اور اس میں کسی اور زبان کے الفاظ کی ملوٹ نہیں ہوئی؟‬
‫شافعی‪ :‬دلیل بذات خود اللہ کی کتاب میں موجود ہے۔ اللہ تعالی فرماتا ہے‪:‬‬
‫وما أرسلنا من رسول إل بلسان قومه ۔‬
‫ہم نے ہر رسول کو ان کی مخاطب قوم کی زبان ہی میں )دعوت دینے کے لئے( بھیجا‬
‫۔ )ابراہیم ‪(14:4‬‬
‫سائل‪ :‬محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے علوہ پچھلے تمام رسول تو خاص‬
‫طور پر انہی کی اقوام کے لئے بھیجے گئے تھے جب کہ محمد صلی اللہ علیہ و ٰالققہ وسققلم‬
‫تو پوری نسل انسانیت کی طرف مبعوث ہوئے۔ اس کے دو معنی ہو سققکتے ہیققں‪ ،‬ایققک‬
‫تو یہ کہ آپ کی دعوت یا تو صرف اپنی ہی قوم کقی زبقان میقں ت ھی اور پقوری نسققل‬
‫انسانیت کو یہ زبان سیکھنی چاہیے خواہ وہ جتنی بھی سیکھ سکیں۔ دوسرا معنی یہ ہو‬

‫‪47‬‬
‫سکتا ہے کہ محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو تمام انسانیت کی زبان سکھا کققر بھیجققا‬
‫گیا۔ کیا اس بات کا کوئی ثبوت ہے کہ محمد صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کققی دعققوت غیققر‬
‫ملکی زبانوں کی بجائے صرف اور صرف اپنی قوم کی زبان میں ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬چونکہ زبانیں ایک دوسرے سے اتنی مختلف ہیں کہ لوگ ایک دوسرے کی بققات‬
‫نہیں سمجھ سکتے اس وجہ سے کچھ لوگوں کو دوسروں کی زبان سققیکھ لینققی چققاہیے۔‬
‫زبان میں ترجیح انہی لوگوں کو دی جائے گی جن کی زبان وہی ہو جو ک قہ رسققول الل قہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زبان ہے۔ یہ بات غیر مناسب ہے کہ رسققول الل قہ صققلی الل قہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کی قوم کے لوگ )آپ کا پیغام سمجھنے کے لئے( غیر عربوں کی پیروی‬
‫اختیار کر لیں اور ان کی زبققان سققیکھیں خققواہ وہ ایققک ہی حققرف ہو۔ اس کققی بجققائے‬
‫مناسب بات یہ ہے کہ دوسری زبان والے اس زبان کو سیکھیں اور وہ لوگ جققو دوسققرے‬
‫مذاہب کے پیروکار ہیں‪ ،‬انہیں چاہیے کہ وہ اسی دین کی پیروی کریں۔‬
‫نوٹ‪ :‬مذہبی مباحث میں ایک بحث یہ موجود ہے کہ خدا کو اگر اپنا پیغام پوری نسل انسقانیت کقے لئے‬
‫بھیجنا ہے تو وہ اسے کسی ایسی زبان میں نازل کرے جو کسی مخصوص قوم کققی زبققان ن قہ ہو ورن قہ‬
‫خدا جانبدارانہ رویہ اختیار کر رہا ہو گا۔ یہ محض ایک لغو بات ہے۔ دین کا مقصد محض ہدایات دینا ہی‬
‫نہیں ہے بلکہ یہ تو بندے اور خدا کا تعلق قائم کرنے کے لئے نازل کیققا گیققا ہے۔ اگققر خققدا کققی کتققاب کققو‬
‫اسپرانتو ٹائپ کی کسی زبان میں نازل کر بھی دیا جاتا تو یہ کبھی اپنے مخاطبین میققں جققوش‪ ،‬جققذبہ‬
‫اور خدا سے تعلق پیدا نہ کر سکتی۔‬
‫اس معاملے میں فطری طریقہ یہی ہے کہ اس پیغام کو اولین مخاطبین کی زبان میں نازل کر دیققا‬
‫جائے اور وہ لوگ دوسروں تک یہ پیغام ترجمہ کر کے یا ان لوگوں کو یہ زبان سکھا کر پہنچائیں۔ اسلم‬
‫کی تاریخ میں یہی فطری اختیار کیا گیا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ تورات کو عبرانی‪ ،‬انجیققل کققو سققریانی اور‬
‫قرآن کو عربی میں نازل کیا گیا کیونکہ یہ ان کے اولین مخاطین کی زبانیں تھیں۔‬

‫اس کی وجہ یہ ہے کہ اللہ تعالی نے ایک سے زائد مقام پر ارشاد فرمایا‪:‬‬


‫ن‬
‫مق ْ‬
‫ن ِ‬
‫كقو َ‬ ‫ن۔ عََلقى قَل ِْبق َ‬
‫ك ل ِت َ ُ‬ ‫ح ال َ ِ‬
‫ميق ُ‬ ‫ن۔ ن ََز َ‬
‫ل ِبقهِ القّرو ُ‬ ‫مي َ‬‫ب ال َْعال َ ِ‬‫ل َر ّ‬ ‫زي ُ‬‫ه ل َت َن ْ ِ‬
‫وَإ ِن ّ ُ‬
‫ن۔‬‫مِبي ٍ‬‫ي ُ‬‫ن عََرب ِ ّ‬ ‫سا ٍ‬‫ن۔ ب ِل ِ َ‬
‫منذِِري َ‬ ‫ال ْ ُ‬
‫یہ تمام جہانوں کے رب کی نازل کردہ چیز ہے۔ اسے آپ کے دل کققی طققرف امققانت دار‬
‫روح نے اتارا ہے تاکہ آپ اس سے انہیں خبردار کریں۔ صاف صققاف عربققی زبققان میققں۔‬
‫)الشعرا ‪(195-26:192‬‬
‫وكذلك أنزلناه حكما ً عربيا ً ۔‬
‫اسی طرح ہم نے تم پر یہ فرمان عربی میں نازل فرمایا۔ )الرعد ‪(13:37‬‬

‫وكذلك أوحينا إليك قرآنا ً عربيا ً لتنذر أم القرى‪ ،‬و َ‬


‫من حولها ۔‬
‫اسی طرح ہم نے تمہاری طرف یہ قرآن عربی میں نازل کیا ہے تاکہ تققم مرکققزی ش قہر‬
‫اور اس کے گرد و نواح کے لوگوں کو خبردار کرو۔ )الشوری ‪( 42:7‬‬
‫حم‪ .‬والكتاب المبين‪ .‬إنا جعلناه قرآنا ً عربيا ً لعلكم تعقلون ۔‬
‫قسم ہے اس واضح کتاب کی کہ ہم نے یہ عربی زبان کا قققرآن بنایققا ہے تققاکہ تققم لققوگ‬
‫اسے سمجھو۔ )الزخرف ‪(3-43:1‬‬
‫قرآنا ً عربيا ً غيَر ذي ِ‬
‫عوٍَج لعلهم يتقون ۔‬
‫ایسا قرآن جو عربی زبان میں ہے اور اس میں کوئی ٹیڑھ نہیں ہے تا کہ ی قہ ڈرن قے وال قے‬
‫بنیں۔ )الزمر ‪( 39:28‬‬
‫ان تمام آیات میں اللہ تعالی نے اس بات کو واضح کر دیا ہے کہ اس کققی کتققاب عربققی‬

‫‪48‬‬
‫زبان میں ہے اور اس سے یہ بات یقینی طور پر ناممکن ہے کہ وہ عربی کے علوہ کسققی‬
‫اور زبان میں دو آیات ہی نازل کر دے۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ن الذي ُيلحدون إليه‬
‫ولقد نعلم أنهم يقولون‪ :‬إنما يعلمه بشر‪ .‬لسا ُ‬
‫أعجمي‪ ،‬وهذا لسان عربي مبين ۔‬
‫ہمیں معلوم ہے کہ یہ لوگ تمہارے متعلق کہتے ہیں کہ اس شخص کو ایک آدمی سققکھاتا‬
‫پڑھاتا ہے۔ حالنکہ ان کا اشارہ جس شخص کی طرف ہے اس کی زبان عجمی ہے اور‬
‫یہ صاف عربی زبان ہے۔ )النحل ‪(16:103‬‬

‫ولو جعلناه أعجميا ً لقالوا‪ :‬لول فُ ّ‬


‫صلت آياته‪ ،‬أعجمي وعربي؟‬
‫اگر ہم اس قرآن کو کسی عجمی زبان میں نازل کر دیتے تو یہ لوگ کہتققے‪" ،‬اس کققی‬
‫آیات کو واضح طور پر بیان کیوں نہیں کیا گیا؟" یہ عجیب بات ہے کہ کلم عجمی زبان‬
‫میں ہے اور مخاطب عرب لوگ۔ )حم سجدہ ‪(41:44‬‬
‫اللہ تعالی نے ہمیں ان نعمتوں سے آگاہ کیا ہے جو اس نے اپنے رسققول کقے خققاص مقققام‬
‫کے ذریعے ہم پر کیں‪:‬‬
‫ص عَل َي ْك ُق ْ‬
‫م‬ ‫ريق ٌ‬
‫ح ِ‬
‫م َ‬ ‫زي قٌز عَل َي ْقهِ َ‬
‫مققا عَن ِت ّق ْ‬ ‫س قك ُ ْ‬
‫م عَ ِ‬ ‫ن َأن ُ‬
‫ف ِ‬ ‫مق ْ‬‫ل ِ‬‫سققو ٌ‬ ‫جققاَءك ُ ْ‬
‫م َر ُ‬ ‫ققد ْ َ‬ ‫لَ َ‬
‫م۔‬
‫حي ٌ‬
‫ف َر ِ‬‫ن َرُءو ٌ‬ ‫مِني َ‬ ‫ِبال ْ ُ‬
‫مؤْ ِ‬
‫دیکھو‪ ،‬تمہارے پاس ایک ایسا رسققول آئے ہیققں جققو خققود تم ہی میققں سقے ہیققں۔ تم ہارا‬
‫نقصان میں پڑنا انہیں شاق ہے۔ تمہاری فلح کے وہ حریص ہیں اور ایمققان لن قے والققون‬
‫کے لئے وہ شفقت فرمانے والے اور نہایت مہربان ہیں۔ )التوبۃ ‪(9:128‬‬
‫ُ‬
‫م‪،‬‬ ‫ه‪ ،‬وَي َُز ّ‬
‫كيهِق ْ‬ ‫م ي َت ْل ُققو عَل َي ْهِق ْ‬
‫م آي َققات ِ ِ‬ ‫سققوًل ِ‬
‫من ْهُق ْ‬ ‫ن َر ُ‬‫مّيي ق َ‬‫ث فِققي اْل ّ‬ ‫ذي ب َعَق َ‬ ‫هُقوَ ال ّق ِ‬
‫ن۔‬ ‫مِبي ٍ‬ ‫ل ُ‬‫ضَل ٍ‬ ‫في َ‬ ‫ل لَ ِ‬ ‫ن قَب ْ ُ‬‫م ْ‬ ‫ن َ‬
‫كاُنوا ِ‬ ‫ة‪ ،‬وَإ ِ ْ‬
‫م َ‬ ‫ب َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬ ‫م ال ْك َِتا َ‬
‫مه ُ ْ‬‫وَي ُعَل ّ ُ‬
‫وہی ہے جس نے امیوں میں ایک رسول انہی میں سے اٹھایقا جقو انہیققں اس کقی آیقات‬
‫سناتا ہے‪ ،‬انہیں پاک کرتا ہے اور )اس کے لئے( انہیں کتاب و حکمت کی تعلیم دیتققا ہے۔‬
‫حالنکہ اس سے پہلے وہ لوگ کھلی گمراہی میں پڑے ہوئے تھے۔ )الجمعۃ ‪(62:2‬‬
‫اللہ تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو اپنی نعمتوں کققی پہچققان کققروائی‬
‫اور فرمایا‪:‬‬
‫م َ‬
‫ك۔‬ ‫قوْ ِ‬ ‫ه ل َذِك ٌْر ل َ َ‬
‫ك وَل ِ َ‬ ‫وَإ ِن ّ ُ‬
‫یہ ایک یاد دہانی ہے تمہارے اور تمہاری قوم کے لئے۔ )الزخرف ‪(43:44‬‬
‫اللہ تعالی نے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی قققوم پققر یقہ احسققان فرمایققا کقہ اپنققی‬
‫کتاب میں ان کا نام نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے نام کے ساتھ وابستہ کر دیا۔‬
‫شيرت َ َ َ‬ ‫َ‬
‫ك اْلقَْرِبي َ‬
‫ن۔‬ ‫وَأنذِْر عَ ِ َ‬
‫اپنے قریبی رشتے داروں کو خبردار کیجئے۔ )الشعراء ‪(26:214‬‬
‫حوْل ََها ۔‬ ‫م ال ْ ُ‬ ‫ُ‬
‫ن َ‬
‫م ْ‬
‫قَرى وَ َ‬ ‫ل ِت ُن ْذَِر أ ّ‬
‫تاکہ اس کے ذریعے آپ مرکزی شہر اور اس کقے گقرد و نقواح کقے لوگقوں کقو خقبردار‬
‫کریں۔ )الشوری ‪(42:7‬‬
‫شافعی‪ :‬اس آیت میں ام القری‪ ،‬یعنی شہروں کی ماں یا مرکزی شہر سے مققراد مکقہ‬
‫ہے جو کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور آپ کی قوم کا شہر تھا۔ اللہ تعالی نے‬
‫اپنی کتاب میں ان کی اس خصوصی اہمیت کو بیان کیا اور ان کے ساتھ دوسقرے عقام‬
‫لوگوں میں کیا جنہیں )اس کتققاب کقے ذریعقے دیققن اور آخققرت سقے( خققبردار کیققا گیققا۔‬

‫‪49‬‬
‫خبردار کرنے کی یہ دعوت عربی زبان میں تھی جو کہ خاص حضور صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کی قوم کی زبان تھی۔‬
‫ہر مسلمان پر یہ لزم ہے کہ وہ حتی المقدور کم از کم اتنققی عربققی زبققان سققیکھ لقے‬
‫جس سے وہ اس قابل ہو سکے کہ اس بات کا اقرار کر لے کہ اللہ کے سوا کوئی معبققود‬
‫نہیں اور محمد اس کے بندے اور رسول ہیں‪ ،‬قرآن مجید کی تلوت کر سققکے‪ ،‬اور اللققہ‬
‫کا نماز میں وہ ذکر کر سکے جو اس پر لزم کیا گیا ہے جیسے تکبیر‪ ،‬تسبیح‪ ،‬تشہد‪ ،‬اور‬
‫اسی طرح کے دیگر اذکار۔‬
‫محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‪ ،‬جن پر اللہ تعالی نقے نبققوت ختققم کققر دی‬
‫اور جن کے ذریعے اپنی سب سے آخری کتاب نازل فرمائی‪ ،‬کی زبان مبققارک کققو اپن قے‬
‫فائدے کے لئے )غیر عرب لوگوں کو( مزید اتنا سیکھنا چاہیے کہ انسان نماز ادا کر سکے‬
‫اور اس میں اللہ کا ذکر کر سکے‪ ،‬بیت اللہ تک آ کر )حج و عمرہ ک قے مناسققک ادا کققر(‬
‫سکے‪ ،‬قبلے کا تعین کر سکے‪ ،‬اور اس کے ذمے جو فرائض ہیققں انہیققں ادا کققر کقے اپنقے‬
‫رب کی طرف پلٹ سکے۔ اس معاملے میں انہیں اہل عرب کی پیروی کرنی چققاہیے ن قہ‬
‫کہ اہل عرب ان کی پیروی کریں۔‬
‫قرآن کے صرف عربی زبان ہی میں نزول کی وجہ جو میں بیان کرنا چاہتا ہوں وہ ی قہ‬
‫ہے کہ اللہ کی کتاب کو جاننے والے اہل علم میں سے کوئی ایسا نہیں ہہہے جققو اس زبققان‬
‫کی وسعت یعنی اس کے ایک لفقظ کقے متعققدد معقانی اور ایققک معنققی کقے لئے متعقدد‬
‫الفاظ سے ناآشنا ہو۔ عربی سے ناواقفیت کے باعث جو شققبہات پیققدا ہوتے ہیققں وہ اس‬
‫وقت دور ہو جاتے ہیں جب انسان اس زبان کو سیکھ لے۔‬
‫لوگوں کو اس طرف توجہ دلنا کہ قرآن عربققی زبققان میققں نققازل ہوا دراصققل تمققام‬
‫مسلمانوں کو ایک مخلصانہ مشورہ دینا ہے )ک قہ وہ عربققی سققیکھیں( ۔ اس نصققیحت پققر‬
‫عمل کرنا ان کے لئے لزمی ہے اور اس اچھے عمل سقے و ہی غفلقت برتقے گقا جقو بقے‬
‫وقوفی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اچھے مواقع سے فائدہ اٹھانا نہ جانتا ہو۔ خیر خواہی میں یہ‬
‫چیز شامل ہے کہ کسی کے سامنے حق کو واضح کر دیا جائے۔ حق بات اور مسققلمانوں‬
‫کی خیر خواہی اللہ تعالی کی اطاعت ہی میں ہے اور اللہ تعالی کی اطققاعت ہر نیکققی‬
‫کی جامع ہے۔‬
‫سفیان بن عینیہ‪ ،‬زید بن علقہ کے ذریعے جریر بن عبداللہ رضققی الل قہ عن قہ س قے روایققت‬
‫کرتے ہیں کہ انہوں نے فرمایا‪" ،‬ہم نے نبی صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم کققی اس بققات پققر‬
‫بیعت کی کہ ہم ہر مسلمان کے خیر خواہ ہوں گے۔" )بخاری‪ ،‬مسلم(‬
‫ابن عینیہ‪ ،‬سہیل بن ابی صالح سے‪ ،‬وہ عطا بن یزید سے‪ ،‬اور وہ تمیم داری رضققی الل قہ‬
‫عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬دین خیر خققواہی‬
‫ہے‪ ،‬دین خیر خواہی ہے‪ ،‬دین خیر خواہی ہے اللہ کے لئے‪ ،‬اس کققی کتققابوں ک قے لئے‪ ،‬اس‬
‫کے نبیوں کے لئے‪ ،‬مسلمانوں کے حکمرانوں کے لئے اور ان کے عققام لوگققوں کقے لئے۔"‬
‫)مسلم‪ ،‬نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ترمذی(‬
‫اللہ تعالی نے اپنی کتاب میں عربوں سے انہی کققی زبققان میققں خطققاب فرمایققا۔ اس‬
‫خطاب میں جو الفاظ استعمال کئے گئے ان کے معانی وہی تھے جو وہ عققرب پہل قے ہی‬
‫سے جانتے تھے۔ اس میں ان کی زبان کی وسعت بھی شامل ہے۔‬

‫‪50‬‬
‫باب ‪ :5‬خاص اور عام‬
‫نوٹ‪ :‬یہاں سے اصول فقہ کی اہم ترین بحث شروع ہو رہی ہے‪ ،‬جس کققا عنققوان ہے‪ ،‬خققاص اور عققام۔‬
‫"خاص" سے مراد دین کے وہ احکامات ہیں جو کسی مخصوص شخص‪ ،‬مخصقوص جگقہ یقا مخصقوص‬
‫صورتحال سے متعلق ہیں۔ "عام" سے مراد وہ احکامات ہیں جن پر عمل کرنا رسققول الل قہ صققلی الل قہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم سے لے کر قیامت تک تمام مسلمانوں کی ذمہ داری ہے۔‬
‫یہ بحث بہت زیادہ اہمیت کی حامل ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ ایسا ممکن ہے کہ ایک حکم الل قہ تعققالی‬
‫نے کسی خاص صورتحال کے لئے دیا ہو لیکن اس پر عمل کرنے کو قیامت تک کے مسلمانوں ک قے لئے‬
‫لزم قرار دے دیا جائے۔ اسی طرح اس غلطی کا احتمال بھی ہے کہ ایک حکم ابدی نوعیت کا ہے اور‬
‫اسے کسی مخصوص صورتحال سے متعلق قرار دے دیا جائے۔ یہ ایسی غلطیاں ہیں جن کی بنیققاد پققر‬
‫دور قدیم اور دور جدید میں بہت سے مسائل پیدا ہوئے ہیں۔ خاص اور عام کے صققحیح تعیققن ہی سقے‬
‫اسلمی قانون کو صحیح طور پر ہر دور میں نافذ کیا جا سکتا ہے۔‬

‫اللہ تعالی نے کسی چیز کو بیان کرنے کا جو طریقہ اختیار کیا اس میں یہ بات شامل‬
‫ہے کہ‪:‬‬
‫• کسی بات کا ایک حصہ اپنے ظاہری مفہوم ہی میققں عقام ہوتققا ہے اور یقہ حکققم‬
‫عمومی نوعیت کا ہوتا ہے۔ اس صورت میں یہ بات )وضاحت کے لئے( کسققی اور‬
‫بات کی محتاج نہیں ہوتی۔‬
‫• بعض اوقات ایک حکققم ظققاہری طققور پققر عققام ہوتققا ہے لیکققن اس میققں کققوئی‬
‫خصوصی صورتحال بھی شامل ہوتی ہے۔ اس کے تعین کے لئے اسققی آیققت میققں‬
‫شامل بعض الفاظ سے استدلل کرنا ضروری ہوتا ہے۔‬
‫• بعض اوقات حکم بظاہر عمومی الفاظ میں دیا جاتقا ہے لیکقن اس سقے مقراد‬
‫کوئی خصوصی صورتحال ہوتی ہے۔ اس کا پتہ آیت کے سیاق و سباق سے چلتققا‬
‫ہے اور اس سے ظاہری معنی مراد لینے درست نہیققں ہہہوتے۔ اس پققوری بققات کققا‬
‫علم یا تو کلم کے شروع سے ہی چل جاتا ہے‪ ،‬یا پھر درمیان سے اور یا پھر آخققر‬
‫سے۔‬
‫• عربوں کی زبان میں ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ گفتگو کا پہل حصہ بعد وال قے کققی‬
‫وضاحت کر دیتا ہے اور بسا اوقات بعد وال حصہ پہلے حصے کی وضاحت کر دیتققا‬
‫ہے۔ ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ عرب کسی موضوع پر گفتگو کریں اور کقوئی بقات‬
‫الفاظ میں بیان نہ کریں کیونکہ اس کا معنی بغیر الفاظ کقے ہی محققض اشققارے‬
‫سے واضح کر دیا جائے۔ اس قسم کی گفتگو وہ شخص تو سمجھ سققکتا ہے جققو‬
‫عربی زبان کا اعلی درجے کا عالم ہو لیکن اس شخص کے لئے سمجھنا مشققکل‬
‫ہے جو اس زبان کو زیادہ نہ جانتا ہو۔‬
‫• بعض اوقات عرب لوگ‪ ،‬ایک ہی چیز کے کئی نام رکھ لیتے ہیں اور بسا اوقققات‬
‫ایک لفظ کے متعدد معانی ہوتے ہیں۔ )ان کا تعین بھی بہت ضروری ہے۔(‬
‫معانی سے متعلق یہ تمام نکات جو میں نے بیان کئے‪ ،‬اہل علم اچھی طققرح جققانتے ہیققں‬
‫اگرچہ ایسا ممکن ہے کہ ایک عالم ایک بات جانتا ہو اور دوسری بققات س قے نققاواقف ہو‬
‫جبکہ دوسرا عالم دوسری بات جانتا ہو اور پہلی سے ناواقف ہو۔ اسی زبان میں قققرآن‬
‫اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث بیان ہوئے ہیققں۔ اس وج قہ س قے جققو اس‬
‫سے ناواقف ہو اس کے لئے اس زبان کا علم حاصل کرنا ضروری ہے۔‬

‫‪51‬‬
‫جو شخص بھی عربی زبان سے پوری طرح واقف نہیں ہے‪ ،‬وہ اگر )قرآن کے( صحیح‬
‫یا غلط سے متعلق کوئی بات کرتا ہے اور اس کی بات نادانستگی میں درست بھی ہو‬
‫جاتی ہے تو اس شخص نے ایک غلط کام کیا۔ یہ ایسی غلطی ہے جققس ک قے لئے کققوئی‬
‫عذر قابل قبول نہیں ہے۔‬

‫کتاب الل ہ کی بظا ہر عام آیت جو عمومی نوعیت ہی کی‬


‫ہے اور خاص اسی میں داخل ہے‬
‫پہلی مثال )عام آیت جس کا مفہوم بھی عام ہے(‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫كي ٌ‬
‫ل۔‬ ‫يٍء وَ ِ‬
‫ش ْ‬ ‫يٍء وَهُوَ عََلى ك ُ ّ‬
‫ل َ‬ ‫خال ِقُ ك ُ ّ‬
‫ل َ‬
‫ش ْ‬ ‫الل ّ ُ‬
‫ه َ‬
‫اللہ ہر چیز کا خالق ہے اور وہ ہر چیز پر نگہبان ہے۔ )الزمر ‪( 39:62‬‬
‫َ‬
‫ت َواْلْر َ‬
‫ض۔‬ ‫ماَوا ِ‬ ‫خل َقَ ال ّ‬
‫س َ‬ ‫ه ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫الل ّ ُ‬
‫اللہ ہی ہے جس نے آسمانوں اور زمین کو بنایا۔ )ابراہیم ‪( 14:32‬‬
‫ض إ ِّل عََلى الل ّهِ رِْزقَُها ۔‬ ‫َْ‬
‫داب ّةٍ ِفي الْر ِ‬
‫ن َ‬
‫م ْ‬
‫ما ِ‬
‫وَ َ‬
‫زمین میں کوئی ایسا جانور نہیں ہے جس کا رزق اللہ کے ذمے نہ ہو۔ )ھود ‪(11:6‬‬
‫یہ وہ عام جملے ہیں جن میں کوئی خاص چیز داخل نہیں ہے۔ ہر چیز جس میں آسمان‪،‬‬
‫زمین‪ ،‬جانور‪ ،‬درخت اور اسی طرح کی تمام چیزیں شامل ہیں۔ اللہ تعالی نے ان سب‬
‫کو بنایا ہے اور وہی ہر جاندار مخلوق کو رزق پہنچانے وال ہے۔ کس چیز کققا مقققام کققون‬
‫سا ہے‪ ،‬اس بات کو وہی اچھی طرح جانتا ہے۔‬
‫دوسری مثال )عام آیت جس میں عام اور خاص دونوں مراد ہیں(‬
‫اللہ تعالی کا ایک اور جگہ ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫كا َ َ‬
‫ل الل ّ ِ‬
‫ه‬ ‫سو ِ‬
‫ن َر ُ‬ ‫خل ّ ُ‬
‫فوا عَ ْ‬ ‫ن ي َت َ َ‬
‫بأ ْ‬‫ن اْلعَْرا ِ‬
‫م َ‬ ‫حوْل َهُ ْ‬
‫م ِ‬ ‫ن َ‬ ‫م ْ‬‫دين َةِ وَ َ‬
‫م ِ‬‫ل ال ْ َ‬‫ن ِلهْ َِ‬ ‫ما َ‬ ‫َ‬
‫سه ِ ۔‬‫ف ِ‬‫ن نَ ْ‬‫م عَ ْ‬ ‫سه ِ ْ‬‫ف ِ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫وَل ي َْرغُبوا ب ِأن ُ‬
‫مدینے کے باشندوں اور اس کے گرد و نواح کے رہنے والے دیہاتیوں کو یہ ہرگز زیبا نہ تھا‬
‫کہ وہ اللہ کے رسول کو چھوڑ کر گھروں میققں بیٹقھ رہتقے اور اس کققی طققرف سقے بقے‬
‫پرواہ ہو کر اپنی اپنی جان کی فکر میں لگ جاتے۔ )التوبہ ‪(9:120‬‬
‫)اس آیت کا ایک پہلو یہ ہے کہ( یہاں بظاہر تمام عقرب دی ہاتیوں سقے عمقومی طقور پقر‬
‫خطاب کیا گیا ہے لیکن درحقیقت یہاں ان مخصوص مردوں کا ذکر ہے جو جہاد پر جانے‬
‫کی طاقت رکھتے تھے۔‬
‫)دوسرا پہلو یہ ہے کہ( کسی شخص کے لئے یہ درست نہیں ہے کہ وہ نبی صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم سے بے پرواہ ہو کر اپنی جان کی فکر میں لگا رہے۔ )یہ ایک عمومی نققوعیت‬
‫کا حکم ہے( جو ان تمام افراد کے لئے ہے خواہ وہ جہاد کرنے کی طاقت رکھتے ہوں یا ن قہ‬
‫ہوں۔ اس اعتبار سے اس آیت میں عمققومی اور خصوصققی دونققوں نققوعیت کقے احکققام‬
‫پائے جاتے ہیں۔‬
‫تیسری مثال )آیت بظاہر عام ہے لیکن مراد خاص ہے(‬
‫جن َققا‬ ‫ن َرب ّن َققا أ َ ْ‬
‫خرِ ْ‬ ‫قول ُققو َ‬
‫ن يَ ُ‬ ‫ن ال ّق ِ‬
‫ذي َ‬ ‫ساِء َوال ْوِل ْ َ‬
‫دا ِ‬ ‫ل َوالن ّ َ‬
‫جا ِ‬
‫ن الّر َ‬
‫م ْ‬
‫ن ِ‬
‫في َ‬
‫ضع َ ِ‬
‫ست َ ْ‬ ‫َوال ْ ُ‬
‫م ْ‬

‫‪52‬‬
‫ظال ِم ِ أ َهْل َُها ۔‬
‫قْري َةِ ال ّ‬
‫ن هَذِهِ ال ْ َ‬
‫م ْ‬
‫ِ‬
‫بوڑھے مرد‪ ،‬عورتیں اور بچے جو کہتے ہیں‪ ،‬اے ہمارے رب! ہمیں اس شہر سے نکال لے‬
‫جس کے رہنے والے ظالم ہیں۔ )النسا ‪(4:75‬‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ذا أ َت ََيا أ َهْ َ‬
‫ما ۔‬
‫فوهُ َ‬
‫ضي ّ ُ‬
‫ن يُ َ‬ ‫ما أهْل ََها فَأب َ ْ‬
‫وا أ ْ‬ ‫ست َط ْعَ َ‬
‫ل قَْري َةٍ ا ْ‬ ‫حّتى إ ِ َ‬
‫َ‬
‫یہاں تک کہ وہ اس بستی میں پہنچے اور وہاں کے لوگوں سے کھانا مانگا لیکن انہوں نے‬
‫ان دونوں کی ضیافت سے انکار کر دیا۔ )الکہف ‪(18:77‬‬
‫اس آیت میں بیان کیا گیا ہے کہ بستی کے تمام لوگوں سقے کھانقا نہیقں مانگقا گیقا ت ھا۔‬
‫اس لئے اس کا وہی مطلب ہے جو اس سے پہلے والی آیت کا ہے جققس میققں شقہر کقے‬
‫ظالم لوگوں کا ذکر ہے۔ شہر کے تمام لوگ ظالم نہ تھے کیققونکہ ان میققں تققو وہ مظلققوم‬
‫لوگ خود بھی شامل ہو جاتے ہیں۔ اس لئے ظالم لوگ ان میں سقے چنققد ہی ت ھے۔ )یقہ‬
‫اس بات کی مثال ہے کہ لفظ تو عمومی نوعیت کا استعمال کیا گیا ہے لیکن اس سققے‬
‫مراد خاص افراد ہیں۔(‬
‫قرآن میں اس بات کی اور بھی مثالیں ہیں لیکن یہ مثالیں کقافی ہیقں۔ حقدیث میقں‬
‫بھی اس کی مثالیں موجود ہیں جو میں اپنے اپنے موقع پر بیان کروں گا۔‬

‫بظا ہر عام آیت جس میں عام اور خاص دونوں شامل‬


‫ہوت ے ہیں‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ل ل ِتعققارُفوا‪ .‬إ َ‬ ‫ُ‬
‫مك ُق ْ‬
‫م‬ ‫ن أك َْر َ‬
‫ِ ّ‬ ‫شُعوًبا وَقََبائ ِ َ َ َ َ‬ ‫جعَل َْناك ُ ْ‬
‫م ُ‬ ‫ن ذ َك َرٍ وَأنَثى وَ َ‬‫م ْ‬‫م ِ‬ ‫قَناك ُ ْ‬ ‫خل َ ْ‬
‫إ ِّنا َ‬
‫َ‬ ‫ّ‬
‫قاك ُ ْ‬
‫م۔‬ ‫عن ْد َ اللهِ أت ْ َ‬ ‫ِ‬
‫بے شک ہم نے تمہیں ایک مرد اور ایک عورت سے پیدا کیققا اور پ ھر تمہیققں قققومیں اور‬
‫قبیلے بنا دیا تاکہ تم ایک دوسرے کو پہچان سکو۔ بے شک تم میں سے الل قہ ک قے نزدیققک‬
‫عزت وال وہی ہے جو خدا سے زیادہ ڈرنے وال ہے۔ )الحجرات ‪(49:13‬‬
‫َ‬
‫ما‬
‫ن۔ أّيا ً‬
‫قققو َ‬ ‫م ل َعَل ّك ُق ْ‬
‫م ت َت ّ ُ‬ ‫ن قَب ْل ِك ُق ْ‬‫مق ْ‬
‫ن ِ‬ ‫ب عََلى ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫ما ك ُت ِ َ‬ ‫م كَ َ‬‫صَيا ُ‬
‫م ال ّ‬ ‫ب عَل َي ْك ُ ْ‬ ‫ک ُت ِ َ‬
‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫خَر۔‬
‫ن أّيام ٍ أ َ‬ ‫م ْ‬‫فرٍ فَعِد ّةٌ ِ‬ ‫س َ‬‫ضا أوْ عََلى َ‬ ‫ري ً‬
‫م ِ‬‫م َ‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫ن ِ‬ ‫ن َ‬
‫كا َ‬ ‫ت فَ َ‬
‫م ْ‬ ‫دا ٍ‬ ‫دو َ‬
‫مع ْ ُ‬ ‫َ‬
‫تم پر روزے فرض کئے گئے ہیں جیسا کہ تم سے پہلی امتوں پر فرض کئے گئے تھے تاکہ‬
‫تم متقی بن سکو۔ چند مقرر دنوں کے یہ روزے ہیں۔ اگر تم میں سے کوئی مریض ہو‬
‫یا سفر میں ہو تو وہ دوسرے دنقوں میققں اتنقی تعقداد پققوری کققر لقے۔ )البقققرۃ ‪-2:183‬‬
‫‪( 184‬‬
‫موُْقوًتا ۔‬
‫ن ك َِتاًبا َ‬
‫مِني َ‬ ‫ت عََلى ال ْ ُ‬
‫مؤْ ِ‬ ‫صَلةَ َ‬
‫كان َ ْ‬ ‫ن ال ّ‬
‫إِ ّ‬
‫بے شک نماز مومنین پر مقررہ اوقات ہی میں فرض ہے۔ )النساء ‪(4:103‬‬
‫اللہ تعالی کی کتاب سے یہ واضح ہے کہ بسا اوقات ایک ہی جملقے میقں خقاص اور عقام‬
‫دونوں شامل ہو جاتے ہیں۔ پہلی مذکورہ آیت میں عام جملہ یہ ہے‪ " ،‬بے شک ہم ن قے تمہیققں‬
‫ایک مرد اور ایک عورت سے پیدا کیا اور پھر تمہیں قومیں اور قبیلے بنا دیا تاکہ تققم ایققک دوسققرے کققو‬
‫پہچان سکو۔" اس آیت میں تمام انسانوں کا ذکر کیا گیا ہے خققواہ وہ حضققور صققلی الل قہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میں ہوں یا آپ سے پہلے ہوں یا بعققد میققں ہوں‪ ،‬خققواہ وہ مققرد‬
‫ہوں یا عورت‪ ،‬اور خواہ کسی بھی قوم یا قبیلے سے تعلق رکھتے ہیں۔‬
‫اسی آیت میں اس کے بعد " بے شک تم میں سے اللہ کے نزدیک عزت وال و ہی ہے جققو خققدا‬

‫‪53‬‬
‫سے زیادہ ڈرنے وال ہے۔" کا جملہ خاص ہے )کیونکہ اس حکم سے چند مخصوص لوگوں کققو‬
‫مستثنی قرار دیا گیا ہے۔(‬
‫اللہ سے ڈرنا اولد آدم کے ہر اس شخص پر لزم ہے جققو صققاحب عقققل اور بققالغ ہو۔‬
‫اس میں جانور‪ ،‬پاگل‪ ،‬اور نابالغ بچے شامل نہیں ہیققں جققو تقققوی ک قے مف ہوم کققو نہیققں‬
‫سمجھتے۔ ایسا شخص جو تقوی کے مفہوم ہی کو نہیں سقمجھتا‪ ،‬انہیقں اللقہ سقے ڈرنقے‬
‫وال یا نہ ڈرنے وال قرار دیا ہی نہیں جا سکتا ۔ اللہ کی کتاب اور حققدیث اسققی بققات کققو‬
‫بیان کرتی ہیں جو میں نے بیان کی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪:‬‬
‫تین قسم کے افراد پر کوئی ذمہ داری نہیں‪ :‬سونے وال جب تک کہ جققاگ نقہ جققائے‪ ،‬بچقہ‬
‫جب تک کہ بالغ نہ ہو جائے اور پاگل جب تک کہ تندرست نہ ہوجائے۔ )ترمققذی‪ ،‬ابققو داؤد‪،‬‬
‫مسند احمد‪ ،‬ابن ماجہ‪ ،‬دارمی(‬
‫اسی طرح روزے اور نماز کا معاملہ ہے۔ یہ اسی شخص پقر فقرض ہیقں جقو عاققل و‬
‫بالغ ہے۔ جو ابھی بالغ نہیں ہوا یا بالغ ہو گیا ہے مگققر پاگققل ہے یققا دوران حیققض‪ ،‬حائض قہ‬
‫عورت ہے ان پر نماز اور روزہ لزم نہیں ہے۔‬

‫بظا ہر عام آیت جس س ے مراد صرف اور صرف خاص ہی‬


‫ہوتا ہے‬
‫پہلی مثال‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫م‪ ،‬فََزاد َهُق ْ‬
‫م‬ ‫خ َ‬
‫شقوْهُ ْ‬ ‫معُققوا ل َك ُق ْ‬
‫م‪َ ،‬فا ْ‬ ‫س قَقد ْ َ‬
‫ج َ‬ ‫ن الن ّققا َ‬ ‫س‪ :‬إ ِ ّ‬ ‫م الن ّققا ُ‬‫ل ل َهُ ْ‬
‫ن َقا َ‬ ‫ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬
‫ل۔‬ ‫م ال ْوَ ِ‬
‫كي ُ‬ ‫ه وَن ِعْ َ‬ ‫سب َُنا الل ّ ُ‬ ‫ماًنا‪ ،‬وََقاُلوا َ‬
‫ح ْ‬ ‫ِإي َ‬
‫وہ جن سے لوگوں نے کہا‪" ،‬بہت سی فوجیں تم ہارے لئے جمققع کققی گئی ہیققں‪ ،‬ان س قے‬
‫ڈرو۔" اس جملے نے ان کا ایمان مزید بڑھا دیا اور وہ بولے‪" ،‬ہمارے لئے الل قہ ہہہی کققافی‬
‫ہے اور وہ بہترین کارساز ہے"۔ ) ٰال عمران ‪(3:173‬‬
‫اس موقع پر لوگوں کے تین متعین گروہ تھے‪ :‬ایک تو وہ جو رسول اللقہ صقلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم کے ساتھ تھے؛ دوسرے وہ جو ان کے خلف جمع ہو کر لڑنے کققے لئے آئے ت ھے‬
‫اور تیسرے وہ جو انہیں ڈرا رہے تھے۔ یہ تیسرا گروہ نہ تو پہلے میں شامل ت ھا اور ن قہ ہی‬
‫دوسرے میں۔ یہاں یہ واضح ہے کہ لفظ "ناس" یعنی لوگوں سقے پققوری نسققل انسققانیت‬
‫مراد نہیں بلکہ ایک مخصوص گروہ مراد ہے جو مسلمانوں پققر حملقہ آور ہوا ت ھا یقا جققو‬
‫انہیں اس حملے سے ڈرا رہا تھا۔ یہ بات معلوم ہے کہ ان تینوں گروہوں میقں سقے کقوئی‬
‫بھی پوری نسل انسانیت پر مشتمل نہ تھا۔‬
‫چونکہ عربی زبان میں لفظ "ناس" یعنی لوگوں کا اطلق کم از کم تین افراد پر یققا‬
‫پوری نسل انسانیت پر یا پھر ان کے درمیان انسانوں کی کسی بھی تعداد پققر کیققا جققا‬
‫سکتا ہے‪ ،‬اس لئے عربی زبان میں یہ کہنا بالکل درست ہے کہ "لوگوں ن قے ک ہا" جبک قہ وہ‬
‫لوگ محض چار آدمی ہی ہوں جنہوں نے مسلمانوں کو اس حملقے سقے ڈرایققا۔ یقہ و ہی‬
‫تھے جو احد کی جنگ میں پلٹ کر بھاگ جانے والوں میں سے تھے۔‬
‫ان تینوں گروہوں کی تعداد محدود تھی۔ جو لوگ مسلمانوں پر حملے ک قے لئے جمققع‬
‫ہوئے‪ ،‬ان کے مقابلے میں ان لوگوں کی تعداد زیادہ تھی جو انہی کے شہروں سے تعلققق‬
‫رکھتے تھے لیکن حملہ آور ہونے کے لئے جمع ہونے والوں میں شامل نہ ہوئے۔‬

‫‪54‬‬
‫دوسری مثال‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫ن الّلققهِ َلقق ْ‬
‫ن‬ ‫دو ِ‬ ‫ن ُ‬‫م ْ‬ ‫ن ِ‬‫عو َ‬ ‫ن ت َد ْ ُ‬
‫ذي َ‬‫ن ال ّ ِ‬
‫ه‪ .‬إ ِ ّ‬ ‫مُعوا ل َ ُ‬ ‫ل َفا ْ‬
‫ست َ ِ‬ ‫مث َ ٌ‬‫ب َ‬ ‫ضرِ َ‬
‫س ُ‬ ‫َياأي َّها الّنا ُ‬
‫ه‪.‬‬
‫من ْق ُ‬
‫ذوهُ ِ‬ ‫ق ُ‬ ‫ش قي ًْئا َل ي َ ْ‬
‫س قَتن ِ‬ ‫ب َ‬ ‫م الذ َّبا ُ‬ ‫سل ُب ْهُ ْ‬‫ن يَ ْ‬‫ه‪ ،‬وَإ ِ ْ‬ ‫مُعوا ل َ ُ‬ ‫جت َ َ‬‫قوا ذ َُباًبا وَل َوْ ا ْ‬‫خل ُ ُ‬ ‫يَ ْ‬
‫ب۔‬ ‫ُ‬
‫مطلو ُ‬‫ْ‬ ‫ْ‬
‫ب َوال َ‬ ‫ّ‬
‫ف الطال ِ ُ‬ ‫ضع ُ َ‬ ‫َ‬
‫لوگو! ایک مثال دی جاتی ہے‪ ،‬اسے غور سے سنو۔ جن معبودوں کو تققم الل قہ ک قے سققوا‬
‫پکارتے ہو‪ ،‬وہ سب مل کر ایک مکھی بھی پیدا کرنا چاہیں تو ہرگز نہیں کر سکتے‪ ،‬بلکہ‬
‫اگر مکھی ان سے کوئی چیز چھین کر لے جائے تو وہ اس سے چھڑا بھی نہیققں سققکتے۔‬
‫مدد چاہنے والے بھی کمزور اور جن سے مدد طلب کی گئی ہے وہ بھی کمزور۔ )الحققج‬
‫‪(22:73‬‬
‫اس آیت میں بھی بظاہر تو خطاب تمام انسانوں سے لگتا ہے لیکن عربی زبققان کقے‬
‫اہل علم اس بات سے آگاہ ہیں کہ یہاں عام لفظ "ناس" کقا اسققتعمال بعقض مخصققوص‬
‫لوگوں کے لئے کیا گیا ہے۔ یہاں پر خطاب صرف انہی لوگوں سے کیا گیا ہے جو الل قہ کققو‬
‫سوا کچھ اور معبودوں کو پکارتے تھے۔۔۔اللہ تعالی پاک ہے اس شرکیہ فعقل سقے جقو وہ‬
‫کہا کرتے تھے۔۔۔۔ اس آیت میں "ناس" سے مراد تمام انسان اس لئے بھی نہیں لئے جققا‬
‫سکتے کیونکہ اس میں اہل ایمان‪ ،‬پاگل اور نابالغ افراد بھی شامل ہو جائیں گے جو اللہ‬
‫کے سوا کسی اور نہیں پکارتے۔‬
‫اس دوسری آیت میں بھی "ناس" سے مراد ایسے ہی ہے جیسقا کقہ پہلقی آیقت میقں‬
‫لیکن پہلی آیت ان لوگوں پر بھی بالکل واضح ہے جققو عربققی زبققان زیققادہ نہیققں جققانتے۔‬
‫دوسری آیت عربی زبان کے علماء پر زیادہ واضح ہے۔‬
‫تیسری مثال‬
‫ایک اور مقام پر اللہ تعالی کا ارشاد ہے کہ " ث ُم أ َفيضوا من حي ُ َ‬
‫س" یعنققی‬ ‫ث أفَققا َ‬
‫ض الن ّققا ُ‬ ‫ِ ْ َ ْ‬ ‫ّ ِ ُ‬
‫"پھر وہاں سے واپس مڑو جہاں سے لوگ واپس مڑتے ہیں۔" )البقرہ ‪(2:199‬۔ یہ بات واضح ہے کقہ‬
‫پوری دنیا کے انسان رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میققں عرفققات میققں‬
‫اکٹھے نہیں ہوتے تھے۔ اس آیت میں خطاب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور آپ‬
‫کے صحابہ سے ہے جو اس آیت کقے مخققاطب ت ھے لیکققن عربققی زبققان میققں "نققاس" کققا‬
‫استعمال بالکل درست ہے اور یہاں بھی "نققاس" بققول کققر بعققض انسققان مققراد لئے گئے‬
‫ہیں۔‬
‫یہ آیت بھی پہلی دو آیتوں کی طرح ہے۔ اگرچہ پہلی آیقت‪ ،‬دوسقری آیقت کقی نسقبت‬
‫اور دوسری تیسری کی نسبت‪ ،‬غیر اہل عرب کے لئے زیادہ واضح ہے لیکققن ا ہل زبققان‬
‫کے لئے یہ تینوں آیات ہی اس مفہوم میں بالکل واضح ہیں کہ یہاں لفققظ "انسققان" بققول‬
‫کر "بعض انسان" مراد لئے گئے ہیں۔ ان میں سے جقو آیققت عربقی زبقان سقے نقاواقف‬
‫لوگوں پر سب سے کم واضح ہے‪ ،‬اس میں بھی یہ مفہوم پوری طرح سمجھ میں آ جاتا‬
‫ہے۔ سننے والے کا مقصد بولنے والے کی بقات کقو سقمجھنا ہوتقا ہہہے اور سقب سقے کقم‬
‫واضح بات بھی چونکہ مفہوم کو پوری طرح واضح کر دیتی ہے اس لئے کافی ہے۔‬
‫چوتھی مثال‬
‫جاَرةُ " یعنی "جہنم کا ایندھن انسان‬ ‫س َوال ْ ِ‬
‫ح َ‬ ‫اسی طرح قرآن مجید کی آیت " وَُقود ُ َ‬
‫ها الّنا ُ‬
‫اور پتھر ہوں گے۔" میں یہ بات واضح ہے کقہ ی ہاں "انسقان" سقے مقراد بعقض انسقان ہیقں‬
‫ن ۔"‬
‫دو َ‬
‫مب َْعقق ُ‬ ‫سَنى‪ .‬أ ُوْل َئ ِ َ‬
‫ك عَن َْهققا ُ‬ ‫مّنا ال ْ ُ‬
‫ح ْ‬ ‫ت ل َهُ ْ‬
‫م ِ‬ ‫ق ْ‬
‫سب َ َ‬
‫ن َ‬ ‫ن ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫کیونکہ اللہ تعالی نے فرمایا "إ ِ ّ‬

‫‪55‬‬
‫یعنی بے شک وہ لوگ جن کے بارے میں ہماری طرف سے بھلئی )یعنی نجات( کققا فیصققلہ پہلقے ہی ہو‬
‫چکا ہو گا‪ ،‬وہ اس )جہنم( سے دور رکھے جائیں گے۔ )النبیاء ‪(21:101‬‬

‫ایس ے احکام جن ک ے خاص و عام کی وضاحت سیاق و‬


‫سباق س ے ہوتی ہے‬
‫اللہ تبارک تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫وا َ‬
‫ت إ ِذ ْ‬‫س قب ْ ِ‬‫ن فِققي ال ّ‬ ‫دو َ‬ ‫ض قَرةَ ال ْب َ ْ‬
‫ح قرِ إ ِذ ْ ي َعْ ق ُ‬ ‫حا ِ‬
‫ت َ‬ ‫قْري َةِ ال ِّتي َ‬
‫كان َ ْ‬ ‫ن ال ْ َ‬
‫ْ‬ ‫م عَ‬ ‫سأل ْهُ ْ‬
‫َ ْ‬
‫م‬ ‫ه‬ ‫قو‬‫ق‬‫ُ‬ ‫ل‬‫ب‬ ‫ن‬ ‫َ‬
‫ك‬ ‫ل‬‫َ‬ ‫ذ‬‫َ‬ ‫ك‬ ‫م‪.‬‬ ‫ه‬‫تي‬‫عا‪ ،‬ويوم َل يسبتون َل تأ ْ‬ ‫ر‬ ‫ش‬‫ُ‬ ‫م‬ ‫ْ‬
‫ُ ْ‬ ‫ِ َْ‬ ‫َ ِ ِ ْ‬ ‫َ ْ ُِ َ‬ ‫ََ ْ َ‬ ‫ً‬ ‫ّ‬ ‫ت َأِتي ِ ْ ِ َ ُ ُ ْ َ ْ َ َ ْ ِ ِ ْ‬
‫ه‬ ‫ت‬ ‫ب‬‫س‬ ‫م‬ ‫و‬ ‫ي‬ ‫م‬ ‫ه‬ ‫ن‬ ‫تا‬‫حي‬ ‫م‬ ‫ه‬
‫ن۔‬ ‫قو َ‬ ‫س ُ‬
‫ف ُ‬ ‫كاُنوا ي َ ْ‬‫ما َ‬‫بِ َ‬
‫ذرا اس قصبے کا حال بھی ان سے پوچھو جو سمندر کے کنارے واقع تھا۔ انہیں یاد دلؤ‬
‫کہ وہ لوگ ہفتے کے دن سے متعلق احکام ال ہی کققی خلف ورزی کیققا کرتقے ت ھے جبکقہ‬
‫مچھلیاں ہفتے کے دن ہی اچھل اچھل کر سطح پر آتی تھیں اور اس کے علوہ دوسرے‬
‫دنوں میں نہیں آتی تھیں۔ یہ اس لئے ہو رہا تھا کہ ہم ان کی نافرمانیوں کے باعث انہیں‬
‫آزمائش میں ڈال رہے تھے۔ )العراف ‪(7:163‬‬
‫اللہ جل ثناؤہ نے یہاں ایک قصبے کا ذکر کیا ہے جو کہ سمندر کے کنققارے واقققع ت ھا لیکققن‬
‫جہاں اس نے یہ فرمایا کہ "وہ خلف ورزی کرتے ت ھے" تقو اس میقں 'وہ' سقے مقراد اس‬
‫قصبے کے رہنے والے ہیں کیونکہ قصبہ بذات خود نہ تو کسی حکققم کققی خلف ورزی کققر‬
‫سکتا ہے اور نہ ہی نافرمان ہو سکتا ہے۔ اسققی وجقہ سقے خلف ورزی کرنقے والقے اس‬
‫قصبے کے باشندے ہی تھے جنہیں اللہ تعالی نے ان کی نافرمقانی کقے بققاعث آزمقانے کقے‬
‫لئے ہفتے کے دن مچھلیاں بھیجیں۔ ایک اور مقام پر ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫ظالمة‪ ،‬وَأن َ ْ‬
‫سوا‬
‫ح ّ‬ ‫ن۔ فَل َ ّ‬
‫ما أ َ‬ ‫ري َ‬
‫خ ِ‬ ‫ها قَوْ ً‬
‫ما آ َ‬ ‫شأَنا ب َعْد َ َ‬ ‫ت َ ِ َ ً َ‬ ‫ن قَْري َةٍ َ‬
‫كان َ ْ‬ ‫م ْ‬
‫مَنا ِ‬‫ص ْ‬‫م قَ َ‬ ‫َك َ ْ‬
‫ْ‬
‫ن۔‬
‫ضو َ‬ ‫من َْها ي َْرك ُ ُ‬
‫م ِ‬ ‫سَنا إ ِ َ‬
‫ذا هُ ْ‬ ‫ب َأ َ‬
‫کتنی ہی ظالم بستیاں تھیں جنہیں ہم نے پیس کر رکھ دیا اور ان کے بعد دوسری قوم‬
‫کو اٹھایا۔ جب انہیں ہمارا عذاب آتا محسوس ہوا تو وہ لگے وہاں سے ب ھاگنے۔ )النبیقاء‬
‫‪( 12-21:11‬‬
‫اس آیت میں بھی واضح ہے کہ یہ پچھلی آیت کی طرح ہے۔ اس میں ظالم بستیوں کققو‬
‫پیس کر رکھ دینے کا ذکر ہوا ہے۔ یہ بالکل واضح ہے کقہ ظقالم اس کقے رہنقے والقے ت ھے‬
‫کیونکہ بستی کے مکانات تو ظلم کرنے سے رہے۔ اس کے بعد ان ک قے بعققد میققں اٹ ھائی‬
‫جانے والی قوموں کا ذکر ہوا۔ یہاں عذاب پانے والوں کے احساس کا ذکر بھی ہوا ہے۔‬
‫ظاہر ہے کہ احساس صرف انسان ہی کو ہو سکتا ہے نہ کہ بستی کو۔‬

‫ایس ے احکام جو بین السطور پوشید ہ )‪ (Implied‬ہوت ے ہیں‬


‫اور ان ہیں الفاظ میں بیان ن ہیں کیا جاتا‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ة ال ّت ِققي ك ُن ّققا‬
‫قْري َق َ‬ ‫س قأ َ ْ‬
‫ل ال ْ َ‬ ‫ن‪َ ،‬وا ْ‬
‫ظي َ‬
‫ب حافِ ِ‬ ‫ما ك ُّنا ل ِل ْغَي ْ ِ‬
‫مَنا‪ ،‬وَ َ‬ ‫شهِد َْنا إ ِّل ب ِ َ‬
‫ما عَل ِ ْ‬ ‫َما َ‬
‫َ‬
‫ِفيَها‪َ ،‬وال ِْعيَر ال ِّتي أقْب َل َْنا ِفيَها‪ ،‬وَإ ِّنا ل َ َ‬
‫صادُِقو َ‬
‫ن۔‬
‫)برادران یوسف نے کہا( جو کچھ ہمیں معلوم ہوا ہم بس وہی بیققان کققر ر ہے ہیققں‪ ،‬اور‬
‫غیبی علوم کی نگہبانی ہم تو نہ کر سکتے تھے۔ آپ اس قصبے سے پققوچھ لیجی قے ج ہاں‬
‫ہم تھے‪ ،‬اس قافلے سے دریافت کر لیجیے جس کے ساتھ ہم یہاں آئے ہیں۔ ہم اپنے بیققان‬

‫‪56‬‬
‫میں سچے ہیں۔ )یوسف ‪( 82-12:81‬‬
‫اس آیت کا مطلب بھی پچھلی آیت کی طرح ہی ہے۔ اس کے بارے میں عربی زبان کے‬
‫اہل علم میں کوئی اختلف نہیں ہے۔ سیدنا یوسف علیہ الصلوۃ والسلم کے بھائیوں نققے‬
‫اپنے والد ماجد سے عرض کیا کہ آپ اس "قصبے" اور "قافلے" یہ پوچھ لیجیے۔ اس سے‬
‫مراد قصبے یا قافلے کے لوگ ہیں کیونکہ قصبہ یا قافلہ تو انہیققں سققچی بققات بتققانے س قے‬
‫رہا۔‬

‫ایس ے بظا ہر عام احکام جن کی وضاحت سنت س ے ہوتی‬


‫ہے ک ہ و ہ خاص ہیں‬
‫پہلی مثال‬
‫اللہ تبارک تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ن َلقق ُ‬
‫ه‬ ‫ن لَ ْ‬
‫م ي َك ُ ْ‬ ‫ه وَل َد ٌ فَإ ِ ْ‬
‫ن لَ ُ‬ ‫ن َ‬
‫كا َ‬ ‫ك إِ ْ‬‫ما ت ََر َ‬‫م ّ‬‫س ِ‬‫سد ُ ُ‬ ‫ما ال ّ‬ ‫من ْهُ َ‬ ‫حدٍ ِ‬
‫ل َوا ِ‬ ‫وَل َب َوَي ْهِ ل ِك ُ ّ‬
‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫ول َد وورث َ َ‬
‫س۔‬
‫سد ُ ُ‬ ‫مهِ ال ّ‬ ‫خوَةٌ فَل ّ‬ ‫ن لَ ُ‬
‫ه إِ ْ‬ ‫كا َ‬‫ن َ‬‫ث فَإ ِ ْ‬‫مهِ الث ّل ُ ُ‬ ‫واهُ فَل ّ‬ ‫ه أب َ َ‬ ‫َ ٌ َ َ ِ ُ‬
‫اگر میت صاحب اولد ہو تو اس کے والدین میں سے ہر ایک کے لئے اس کے ترکققے کققا‬
‫چھٹا حصہ ہے اور اگر اس کی اولد نہ ہو اور اس کے والدین ہی وارث ہوں تو ماں کققے‬
‫لئے تیسرا حصہ ہے۔ اور اگر میت کے بہن بھائی ہوں تو ماں چھٹے حصے کی حقققدار ہو‬
‫گی۔ )النسا ‪( 4:11‬‬
‫ف ما تر َ َ‬
‫م‬ ‫ن وَل َد ٌ فَل َك ُق ْ‬ ‫ن ل َهُ ّ‬ ‫كا َ‬ ‫ن َ‬ ‫ن وَل َد ٌ فَإ ِ ْ‬ ‫ن ل َهُ ّ‬‫م ي َك ُ ْ‬ ‫ن لَ ْ‬ ‫م إِ ْ‬ ‫جك ُ ْ‬
‫ك أْزَوا ُ‬ ‫ص ُ َ ََ‬ ‫م نِ ْ‬ ‫وَل َك ُ ْ‬
‫َ‬
‫م‬ ‫مققا ت ََرك ُْتق ْ‬‫م ّ‬‫ن الّرُبقعُ ِ‬ ‫ن وَل َُهق ّ‬ ‫ن ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صي َ‬ ‫صي ّةٍ ُيو ِ‬ ‫ن ب َعْدِ وَ ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ن ِ‬‫ما ت ََرك ْ َ‬ ‫م ّ‬ ‫الّرب ُعُ ِ‬
‫ن ب َعْقدِ‬ ‫مق ْ‬ ‫م ِ‬ ‫مققا ت ََرك ْت ُق ْ‬ ‫م ّ‬‫ن ِ‬ ‫مق ُ‬ ‫ن الث ّ ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫م وَلد ٌ فَلهُق ّ‬ ‫َ‬
‫ن لك ُ ْ‬ ‫كا َ‬ ‫ن َ‬ ‫َ‬
‫م وَلد ٌ فَإ ِ ْ‬ ‫َ‬
‫ن لك ُ ْ‬ ‫م ي َك ُ ْ‬ ‫ن لَ ْ‬ ‫إِ ْ‬
‫خ أوَ‬ ‫ة أ َو ام قرأ َةٌ ول َقه أ ٌَ‬ ‫َ‬ ‫ث َ‬ ‫ج ٌ‬ ‫ن َ‬ ‫َ‬
‫ْ‬ ‫َ ُ‬ ‫كلل ق ً ْ ْ َ‬ ‫ل ي ُققوَر ُ‬ ‫ن َر ُ‬ ‫كا َ‬ ‫ن وَإ ِ ْ‬‫ن ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صو َ‬ ‫صي ّةٍ ُتو ُ‬ ‫وَ ِ‬
‫شقَر َ‬ ‫َ‬ ‫أُ ْ‬
‫كاُء فِققي‬ ‫م ُ‬ ‫ك فَهُ ْ‬ ‫ن ذ َل ِ َ‬ ‫كاُنوا أك ْث ََر ِ‬
‫م ْ‬ ‫ن َ‬ ‫س فَإ ِ ْ‬ ‫سد ُ ُ‬ ‫ما ال ّ‬ ‫من ْهُ َ‬ ‫حدٍ ِ‬ ‫ل َوا ِ‬ ‫ت فَل ِك ُ ّ‬ ‫خ ٌ‬
‫َ‬
‫ه‬‫ن الل ّقهِ َوالل ّق ُ‬ ‫مق ْ‬ ‫ة ِ‬ ‫صقي ّ ً‬ ‫ضققاّر وَ ِ‬ ‫م َ‬ ‫ن غَي ْقَر ُ‬ ‫صى ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صي ّةٍ ُيو َ‬ ‫ن ب َعْدِ وَ ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ث ِ‬ ‫الث ّل ُ ِ‬
‫م۔‬ ‫حِلي ٌ‬ ‫م َ‬ ‫عَِلي ٌ‬
‫تمہاری بیویوں نے جو کچھ ترکہ چھوڑا ہے‪ ،‬تمہارے لئے اس کا نصف حصہ ہے اگققر وہ ب قے‬
‫اولد ہوں۔ اولد ہونے کی صورت میں تم چوتھائی حصے کے حق دار ہو جبکہ میت کققی‬
‫کی گئی وصیت پوری کر دی گئی ہو اور اس پر واجب الدا قرض ادا کر دیققا گیققا ہو۔‬
‫وہ )بیویاں( تمہارے ترکے سے چوتھائی حصے کی حق دار ہوں گی اگقر تقم بقے اولد ہو‬
‫ورنہ صاحب اولد ہونے کی صورت میں ان کا حصہ آٹھواں ہو گا اگر وصیت جو تققم ن قے‬
‫کی تھی‪ ،‬پوری کر دی جائے یا قرض جو تم نے چھوڑا تھا ادا کر دیا جائے۔ اگقر وہ مقرد‬
‫و عورت بے اولد بھی ہو اور اس کے ماں باپ بھی زندہ نہ ہوں‪ ،‬مگر اس کا ایک بھائی‬
‫یا بہن ہو‪ ،‬تو بھائی یا بہن ہر ایک کو چھٹا حصہ ملے گا۔ اگر ب ھائی ب ہن ایققک سقے زیقادہ‬
‫ہوں تو کل ترکے کے تہائی میں وہ سب شریک ہوں گے جبکہ میت کی طرف س قے کققی‬
‫گئی وصققیت پققوری کققر دی جققائے اور میققت پققر واجققب الدا قققرض ادا کققر دیققا جققائے‬
‫بشرطیکہ کسی کو نقصان نہ پہنچایا جائے۔ یہ حکم ہے اللہ کی طرف سے اور اللہ دانا و‬
‫بینا اور نرم خو ہے۔ ۔ )النسا ‪( 4:12‬‬
‫اللہ تعالی نے یہ واضح کر دیا کہ والدین اور شریک حیات ان لوگوں میں سے ہیں جن‬
‫کا ذکر )ہر طرح کی( صورت حال میں کیا گیا ہے‪ ،‬یہ عقام الفقاظ میققں بیقان ہوئے ہیقں‬
‫)اور اس سے یہ سمجھ میں آ سکتا تھا کہ تمام والدین اور شریک حیات ہی مراد ہیں۔(‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی حدیث کے ذریعے اس بات کی وضاحت ہو گئی‬
‫کہ اس سے مراد تمام والدین اور شریک حیقات نہیققں بلکقہ صققرف وہ والققدین‪ ،‬اولد اور‬

‫‪57‬‬
‫شریک حیات ہیں جن کا دین ایک ہی ہو اور ان میں سے ہر وارث نہ تو میت کا قاتل ہو‬
‫اور نہ ہی غلم ہو۔‬
‫اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا‪ " :‬جبکہ میت کی طرف سے کی گئی وصققیت پققوری کققر دی جققائے‬
‫اور میت پر واجب الدا قرض ادا کر دیا جائے"۔ اس بات کی وضاحت نبی صلی اللہ علیہ و ٰالققہ‬
‫وسلم نے فرمائی کہ وصیت کی حد کل ترکے کے ایک تہائی سے زیادہ نہیں ہونی چققاہیے‬
‫اور وارثوں کے لئے دو تہائی مال چھوڑ دینا چاہیے۔ آپ نے اس بققات کققی وضققاحت ب ھی‬
‫فرمائی کہ قرض‪ ،‬وصیت اور میراث کی تقسیم سے پہلقے ادا کیققا جققائے گققا۔ میققت کقے‬
‫قرض کی ادائیگی سے پہلے نہ تو وصیت پر عمل کیا جائے گا اور نہ ہی میققراث تقسققیم‬
‫کی جائے گی۔‬
‫اگر حدیث کی یہ وضاحت نہ ہوتی‪ ،‬اور اس پر لوگوں کققا اجمققاع ن قہ ہو گیققا ہوتققا‪ ،‬تققو‬
‫میراث کی تقسیم وصیت اور قرض کی ادائیگی کے بعد نہ ہوتی )بلکہ شاید پہلے ہی ہو‬
‫رہی ہوتی(۔ وصیت شاید قرض سے مقدم ہو جاتی یا اس کققا درجقہ قققرض کقے برابققر آ‬
‫جاتا۔‬
‫نوٹ‪ :‬قرآن مجید اپنے مخاطبین کے لئے بالکل واضح ہے۔ وراثت کے احکام میں ہی ی قہ بیققان فرمققا دیققا‬
‫گیا ہے کہ "ل تدرون ايهم اقرب لکم نفعا۔" یعنی "تمہیں یہ معلوم نہیں ہے کہ تمہارے وارثققوں میققں سقے‬
‫کون تم سے فائدے میں زیادہ قریب ہے۔" اس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ وراثت سے متعلق اللہ تعالی ن قے‬
‫جو احکام بیان فرما دیے ہیں ان کی بنیاد رشتوں کا "فائدہ" ہے۔ جب ایک شخص اپنے باپ کو قتل کر‬
‫دے یا اپنا دین بدل لے تو اس کے نتیجے میں یہ "فائدہ" ختم ہو جاتا ہے۔ رسول اللہ صلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ‬
‫وسلم نے اسی کی وضاحت فرمائی ہے۔ اسی طرح آپ نے وصیت کی حققد مقققرر فرمققائی تققاکہ لققوگ‬
‫پورے مال کی وصیت کر کے وارثوں کو ان کے جائز حق سے محروم نہ کرنے لگ جائیں۔ ادائیگی کققی‬
‫ترتیب کہ پہلے قرض‪ ،‬پھر وصیت اور پھر وراثت کی تقسیم ب ھی قققرآن سقے بالکققل واضققح ہے جسقے‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے عملی صورتوں میں مزید واضح فرما دیا ہے۔ رسول اللہ صلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی یہ وضاحتیں اس بات کو بالکل متعین کر دیتی ہیں جو کہ قرآن مجید کا منشققا‬
‫ہے۔‬

‫دوسری مثال‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫حوا‬
‫سق ُ‬
‫م َ‬
‫ق َوا ْ‬ ‫م إ َِلقى ال ْ َ‬
‫مَراِفق ِ‬ ‫م وَأْيقدِي َك ُ ْ‬ ‫جوهَك ُ ْ‬ ‫سُلوا وُ ُ‬ ‫صلةِ َفاغْ ِ‬ ‫م إ َِلى ال ّ‬ ‫ذا قُ ْ‬
‫مت ُ ْ‬ ‫إِ َ‬
‫ّ‬ ‫ً‬
‫جُنبا َفاطهُّروا ۔‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬
‫م ُ‬ ‫ن كن ْت ُ ْ‬ ‫ن وَإ ِ ْ‬‫م إ ِلى الكعْب َي ْ ِ‬ ‫جلك ْ‬ ‫م وَأْر ُ‬
‫سك ْ‬ ‫ب ُِرُءو ِ‬
‫جب تم نماز کے لئے اٹھو تو منہ اور ہاتھ کہنیوں تک دھو لو‪ ،‬سروں پر مسح کقر لقو اور‬
‫پاؤں ٹخنوں تک دھو لو۔ اگر جنابت کی حالت میں ہو تو نہا کر پققاک ہو جققاؤ۔ )المققائدہ‬
‫‪(5:6‬‬
‫اس آیت سے بظاہر یہ معلوم ہوتا ہے کہ ہر شخص کے لئے پاؤں کو ب ھی اسققی طققرح‬
‫دھونا ضروری ہے جیسا کہ منہ اور ہاتھوں کو دھونا ہر شخص پر لزم ہے جبکہ ایسا نہیں‬
‫ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے موزوں پقر مسقح بھ ہی فرمایقا اور یقہ حکقم‬
‫بھی دیا کہ اگر کسی شخص نے مققوزے پ ہن رک ھے ہیققں تققو وہ مسققح کققر لقے۔ اس سقے‬
‫طہارت مکمل ہو جاتی ہے۔ اس سے یہ معلوم ہوا کہ پققاؤں د ھونے کققی یقہ ذمقہ داری ہر‬
‫وضو کرنے والے شخص پر نہیں ہے بلکہ بعض افراد پر ہے )یعنی جس نے مققوزے ن قہ پ ہن‬
‫رکھے ہوں(۔‬
‫نوٹ‪ :‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے تیمم پر قیاس فرماتے ہوئے موزے اور عمققامے پققر مسققح‬
‫کی اجازت دی۔ اس کا مقصد یہ تھا کہ وضو کرنے والے کو بار بار جرابیں اتارنے یقا عمقامے کقو ک ھول‬

‫‪58‬‬
‫کر دوبارہ باندھنے کی مشقت سے بچایا جائے۔ اس سے معلوم ہوتا ہے ک قہ دیققن عملققی معققاملت میققں‬
‫آسانی کو کس قدر اہمیت دیتا ہے۔‬

‫تیسری مثال‬
‫ایک اور مقام پر ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫ن الل ّهِ ۔‬ ‫َ‬
‫كاًل ِ‬
‫م ْ‬ ‫سَبا ن َ َ‬
‫ما ك َ َ‬
‫جَزاًء ب ِ َ‬ ‫ة َفاقْط َُعوا أي ْدِي َهُ َ‬
‫ما َ‬ ‫سارِقَ ُ‬
‫سارِقُ َوال ّ‬
‫َوال ّ‬
‫چور‪ ،‬خواہ وہ مرد ہو یا عورت‪ ،‬دونوں کے ہاتھ کاٹ دو۔ یہ ان کی کمائی کا بدلہ ہے اور‬
‫اللہ کی طرف سے عبرت ناک سزا۔ )المائدہ ‪(5:38‬‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے وضاحت فرما دی‪" ،‬پھل اور سبزی کی چققوری کققی‬
‫صورت میں ہاتھ نہیں کاٹا جائے گا۔" اور یہ کہ "ہاتھ اسی صورت میں کاٹا جائے گا اگر چوری کے مال‬
‫کی قیمت ربع دینار یا اس سے زیادہ ہے۔" )ترمذی‪ ،‬مالک‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬مسند احمد(‬

‫نوٹ‪ :‬آیت میں یہ سزا اس شخص کے لئے بیان نہیں کی گئی جس نے چوری کر لی ہو بلکہ یہ ک ہا گیققا‬
‫ہے کہ "چور کے ہاتھ کاٹو۔" عربی زبان میں یہ اسم صفت کا صیغہ ہے جس میں چوری کققے لئے اہتمققام‬
‫کرنے کا مفہوم شامل ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ اس شخص کو ہاتھ کققاٹنے کققی سققزا دی جققائے گققی‬
‫جس نے پورے اہتمام اور پلننگ سے چوری کی ہو۔ اسی وجہ سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم‬
‫نے معمولی مقدار کی چوری پر یہ سزا عائد نہیں فرمائی۔ اسی بنیاد پر سیدنا عمر فاروق رضی اللقہ‬
‫عنہ نے یہ فیصلہ فرمایا کہ قحط جیسی ایمرجنسی کی صورت میں ہاتھ کققاٹنے کققی سققزا نقہ دی جققائے‬
‫گی۔ اسی بنیاد پر فقہا کے ایک بڑے گروہ کا نقطہ نظر یہ ہے کہ اگر کسی نے سڑک پر پڑی ہوئی چیققز‬
‫اٹھا لی تو اسے ہاتھ کاٹنے کی سزا نہ دی جائے گی۔ یہ سزا اسے دی جائے گی جس نے کسی محفققوظ‬
‫مقام سے مال چرایا ہو۔ جج ایسے شخص کو ہاتھ کاٹنے سے کم کوئی سزا دے سققکتا ہے تققاکہ وہ آئنققدہ‬
‫اس قسم کی حرکت سے محفوظ رہے۔‬

‫چوتھی مثال‬
‫ایک اور مقام پر ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫جل ْد َةٍ ۔‬ ‫مائ َ َ‬
‫ة َ‬ ‫ما ِ‬
‫من ْهُ َ‬
‫حدٍ ِ‬ ‫دوا ك ُ ّ‬
‫ل َوا ِ‬ ‫ة َوالّزاِني َفا ْ‬
‫جل ِ ُ‬ ‫الّزان ِي َ ُ‬
‫زانیہ عورت اور زانی مرد‪ ،‬دونوں میں سے ہر ایک کو سو کوڑے مارو۔ )النور ‪(24:2‬‬
‫لونڈیوں کے بارے میں ارشاد ہے‪:‬‬
‫ذا أ ُحصن فَإ َ‬
‫ن‬
‫مق ْ‬
‫ت ِ‬
‫ص قَنا ِ‬
‫ح َ‬ ‫مققا عَل َققى ال ْ ُ‬
‫م ْ‬ ‫ف َ‬
‫صق ُ‬ ‫ش قةٍ فَعَل َي ْهِق ّ‬
‫ن نِ ْ‬ ‫ح َ‬
‫فا ِ‬
‫ن بِ َ‬ ‫فَإ ِ َ ْ ِ ّ ِ ْ‬
‫ن أت َي ْق َ‬
‫ب۔‬ ‫ال ْعَ َ‬
‫ذا ِ‬
‫پھر جب وہ نکاح کر لیں اور اس کے بعد کسی بدچلنی کا ارتکاب کریں تو ان پققر اس‬
‫سزا کی نسبت آدھی سزا ہے جو محصنات کے لئے مقرر ہے۔ )النسا ‪(4:25‬‬
‫قرآن نے حکم دیا ہے کہ سو کوڑے کی سزا آزاد کے لئے ہے ن قہ ک قہ غلم ک قے لئے۔ جققب‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے شادی شدہ عورتوں کو زنا کرنے پر رجم فرمایا‬
‫اور انہیں کوڑوں کی سزا نہ دی۔ اس حدیث سے یہ واضح ہوا کہ زنا کرنے پر سو کققوڑے‬
‫کی سزا آزاد اور کنواری عورتوں کے لئے ہے۔ اسی طرح آپ نے یہ وضاحت فرمائی ک قہ‬
‫ہاتھ کاٹنے کی سزا صرف اسی چور کے لئے ہے جو کہ کسی محفققوظ جگقہ سقے چققوری‬
‫کرے اور یہ کہ چوری کے مال قیمت کم از کم ربع دینار ہو۔ جو چیز )حققدیث میققں بیققان‬
‫کردہ( اس تعریف پر پوری نہ اترے‪ ،‬اسے زنا یا چوری نہیں کہا جائے گا۔‬

‫‪59‬‬
‫پانچویں مثال‬
‫اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫ذي ال ْ ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫قْرب َققى‬ ‫ل وَل ِق ِ‬
‫سققو ِ‬
‫ه‪ ،‬وَِللّر ُ‬
‫سق ُ‬
‫م َ‬ ‫ن ل ِل ّهِ ُ‬
‫خ ُ‬ ‫يٍء فَأ ّ‬
‫ش ْ‬‫ن َ‬ ‫م ْ‬ ‫م ِ‬ ‫ما غَن ِ ْ‬
‫مت ُ ْ‬ ‫موا أن ّ َ‬‫َواعْل َ ُ‬
‫ل۔‬‫سِبي ِ‬
‫ن ال ّ‬‫ن َواب ْ ِ‬ ‫كي ِ‬‫سا ِ‬ ‫م َ‬ ‫مى َوال ْ َ‬ ‫َوال ْي ََتا َ‬
‫جان لو کہ جو مال غنیمت تم نے حاصققل کیققا ہے اس کققا پققانچواں حصقہ اللقہ‪ ،‬اس کقے‬
‫رسول‪ ،‬رشتہ داروں‪ ،‬یتیموں‪ ،‬مسکینوں اور مسافروں کے لئے ہے۔ )النفال ‪(8:41‬‬

‫نوٹ‪ :‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کل وقتی طور پر حکومتی و دعوتی معاملت چل رہے ت ھے‬
‫اور آپ کے پاس وقت نہ تھا کہ آپ اپنی ذات اور معاشی معقاملت کقی کفقالت کرتقے۔ اس وجقہ سقے‬
‫مال غنیمت کے خمس )یعنی بیس فیصد حصے( میں یتیموں‪ ،‬مسکینوں اور مسافروں کے حص قے کقے‬
‫علوہ حضور اور آپ کے زیر کفالت افراد کا حصہ مقرر کیا گیا۔ یہ الگ بات ہے کقہ حضققور اور آپ کقے‬
‫گھر والے اپنے حصے کو بھی زیادہ تر یتیموں اور مسکینوں پر ہی خرچ فرماتے اور اپنے گھر میققں کئی‬
‫کئی دن چولہا جلنے کی نوبت بھی نہ آتی۔ مال غنیمت کا باقی حصہ )‪ (%80‬اہل لشققکر میققں تقسققیم‬
‫کر دیا جاتا۔‬
‫اس معاملے میں بنو ہاشم کے ان افراد کا حصہ خاص طور پر مقرر فرمایا گیا جنہوں نے مکہ میققں‬
‫کفار کے مقابلے پر حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی غیر معمولی مدد کی۔ ہاشم رسول اللہ صققلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے پردادا تھے۔ ان کے دو بھائی مطلب اور عبد شمس تھے۔ مطلب کی اولد میققں‬
‫سے بعض افراد جو کہ بنی ہاشم سے بھی رشتہ داری رکھتے تھے‪ ،‬کو ان کی خدمات کے عوض خققاص‬
‫طور پر خمس میں سے حصہ دیا گیا۔ ان خدمات میں خاص طور پر شعب ابی طالب میں حضور کے‬
‫ساتھ اہل مکہ کے بائیکاٹ کو برداشت کرنا ہے۔ جب بھی اہل قریش نے حضور پر حمل قہ کرنققا چا ہا تققو‬
‫بنو ہاشم‪ ،‬خواہ وہ آپ پر ایمان لئے تھے یا نہ لئے تھے‪ ،‬انہوں نے آپ کققی حفقاظت کققی۔ امقام شقافعی‬
‫کی اس بحث سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ بنو ہاشم کا حصہ محض رشتہ داری کی بنیاد پققر ن قہ ت ھا بلک قہ ان‬
‫کی خدمات کے عوض انہیں یہ حصہ دیا گیا۔‬

‫اس آیت میں بیان کردہ "رشتہ داروں" کا حصہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسقلم نقے‬
‫بنو ہاشم اور بنو مطلب کو عطققا فرمایققا۔ اس حققدیث س قے واضققح ہو گیققا کقہ "رشققتے‬
‫داروں" سے مراد بنو ہاشم اور بنو مطلب تھے اور ان کے علوہ اور کوئی نہ تھا۔ ویس قے‬
‫تو تمام قریش ہی آپ کے رشققتے دار ت ھے۔ اس رشققتے میققں بنققو عبققد شققمس اور بنققو‬
‫مطلب برابر تھے کیونکہ یہ سب ایک باپ اور ماں کی اولد ہیں۔ اس معققاملے میققں بنققو‬
‫مطلب میں بعض لوگوں کو دوسروں کی نسبت ی قہ انفرادیققت حاصققل ت ھی ک قہ وہ بنققو‬
‫ہاشم میں سے بھی تھے۔‬
‫بنو مطلب کے تمام افراد کو حصہ نہ دیا گیا بلکہ صرف انہی کو حصہ دیا گیققا جققو بنققو‬
‫مطلب میں شامل ہونے کے ساتھ ساتھ بنو ہاشم سے بھی تعلق رکھتے تھے۔ اس سے یہ‬
‫معلوم ہوتا ہے کہ بنو ہاشم کو ایک مخصوص حصہ دیا گیا جو کہ حضققور صققلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم کے دوسرے رشتہ داروں کو نہ دیا گیا۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ انہوں نے شققعب‬
‫)ابی طالب( میں اور اس سے پہلے اور بعد کقے زمققانے میققں نققبی صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کی مدد کی۔ اسی وجہ سے اللہ تعالی نے انہیں خاص حصہ عطا فرمایا۔‬
‫بنو ہاشم‪ ،‬قریش ہی کا قبیلہ تھا‪ ،‬جسے اسے رشتہ داری میں خمس میققں سقے حصقہ‬
‫دیا گیا۔ ان کے مساوی بنو نوفل )ہاشم کے بھائی نوفل کی اولد( بھی تھے )انہیں حص قہ‬
‫نہ دیا گیا۔ یہ الگ بات ہے کہ( وہ ہاشم سے مختلف ماں سے تعلق رکھتے تھے۔‬
‫اللہ تعالی نے یہ فرمایا کہ " جو مال غنیمت تم نے حاصل کیا ہے اس کا پانچواں حصہ اللققہ‪ ،‬اس‬
‫کے رسول۔۔۔کے لئے ہے" جبکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے حمل قے کققی صققورت‬
‫میں )دشمن کو( قتل کرنے والے کو مقتول کا ذاتققی مققال )جیس قے تلققوار وغیققرہ( عطققا‬

‫‪60‬‬
‫فرمایا۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ جنگ میققں‬
‫حاصل ہونے والے مال غنیمت‪ ،‬جس میں بیس فیصد حصہ نکال جاتا ہے اور بغیققر جنققگ‬
‫کے حاصل کردہ مال غنیمت میں فرق ہے۔ ایسی جنگ جس میقں حملقہ نقہ کیقا گیقا ہو‪،‬‬
‫میں حاصل کردہ دشمن کے مقتول سپاہی کی ذاتی اشیاء کا معاملہ سنت کقے مطقابق‬
‫حملے کی صورت میں مال غنیمت ہی کا سا ہے۔ اس میں پانچواں حصہ نکال جققائے گققا‬
‫)جو غرباء میں تقسیم کیا جائے گا۔(‬
‫نوٹ‪ :‬جنگ کی صورت میں دشمن کے ہاتھ آئے ہوئے معاملے میں یہ قانون بنایا گیققا ک قہ پققورے مققال کققو‬
‫اکٹھا کیا جائے گا اور اس کا بیس فیصد غرباء و مساکین پر خرچ کیا جائے گا جبک قہ اسققی فیصققد ا ہل‬
‫لشکر میں تقسیم کر دیا جائے گا۔ لیکن جنگ میں اگر ایک شخص دشمن کے کسی سققپاہی کققو قتققل‬
‫کر دے اور اس کے جسم پر موجود اشیاء جیسے تلوار یا گھڑی وغیرہ اتار ل قے تققو اس ک قے بققارے میققں‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے یہ فیصلہ فرمایا کہ یہ اسی شخص کا حق ہے جققس نقے دشققمن‬
‫کے سپاہی کو مارا ہے۔ اس میں سے بیس فیصد حصہ الگ نہ کیا جائے گا۔‬
‫اگر حکومتی فوج نے دشمن پر حملہ کیا ہو تو دشمن کے مقتول سپاہی کا ذاتی مال‪ ،‬اس قے مققارنے‬
‫والے فوجی کا حق ہو گا لیکن اگر حملہ نہ کیا گیا ہو تو اس صورت میں دشمن کے مقتول سققپاہی کققا‬
‫ذاتی مال بھی مال غنیمت میں شامل کر کے اکٹھا کیا جائے گا جس میں بیس فیصد غربققاء کققا حص قہ‬
‫نکالنے کے بعد اسی فیصد حکومتی فوج کے سپاہیوں میں تقسیم کیا جائے گا۔‬

‫اگر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی حدیث مبارکہ کا ی قہ اسققتدلل موجققود ن قہ‬
‫ہوتا اور ہم قرآن مجید کے ظاہری الفاظ کی بنیاد پر ہ ہی فیصقلہ کقر رہہہے ہ ہوتے تققو اس‬
‫صورت میں‪:‬‬
‫• ہم ہر اس شخص کو ہاتھ کاٹنے کی سزا دیتے جس کے عمققل کققو "چققوری" کہہہا‬
‫جاتا؛‬
‫• ہر اس آزاد شادی شدہ عورت کو کوڑوں کققی سققزا دیتقے جققس کقے عمققل کققو‬
‫"زنا" کہا جاتا؛‬
‫• خمس میں سے رشتے داروں کا حصہ ہر اس شخص کو دیتے جس کقی رسقول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے رشتے داری ہوتی۔ اس کے نتیجے میں بہت سے‬
‫ایسے لوگوں کو بھی حصہ ملتا جن کققا تعلققق خققون اور نسققل کقے واسققطے سقے‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے ہے؛‬
‫• دشمن کے مقتول سپاہی کے ذاتی مال میں سے بھی بیس فیصد غرباء کے لئے‬
‫نکال جاتا کیونکہ یہ بھی ایک قسم کا مال غنیمت ہے۔‬

‫‪61‬‬
‫باب ‪ :6‬ناسخ و منسوخ احکامات‬
‫اللہ تعالی نے انسان کو اپنے ازلی علم کے مطابق جس مقصد ک قے لئے ب ھی بنایققا‪ ،‬اس‬
‫کا حکم تبدیل کرنے کا اختیار کسی کو نہیں ہے اور وہ حساب تیز رفتاری سے لیتققا ہے۔‬
‫اس نے ان پر ایسی کتاب نازل کی ہے جو ہر چیز کقو واضققح کرنقے والقی اور ہدایت و‬
‫رحمت ہے۔ اس کتاب میں اس نے ایسے احکام بیان کیے ہیں جن کا حکم بققاقی ہے اور‬
‫ایسے احکام بھی جن کا حکم اس نے منسوخ کر دیا ہے۔ یہ اس کا لوگوں پر احسان ہے‬
‫کہ وہ ان کا بوجھ ہلکا کرتا ہے اور ان پقر آسقانی کرتقا ہے۔ اس نقے ان پقر جقو نعمقتیں‬
‫فرمائی ہیں وہ ان میں اضافہ کرتا چل جاتا ہے۔ جو احکام اس نے ان پققر لزم کئے ہیققں‪،‬‬
‫ان پر عمل کرنے کے نتیجے میں وہ انہیں جنت عطقا کققرے گقا اور جہنققم کقی سققزا سقے‬
‫نجات دے گا۔ جو حکم اس نے باقی رکھا یا جو منسوخ کیققا اس میققں اس کققی رحمققت‬
‫ہی شامل ہے۔ ان تمام نعمتوں پر ہم اس کا شکر ادا کرتے ہیں۔‬
‫نوٹ‪ :‬بعض لوگوں کے ذہن میں یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ اللہ کے حکم کو تبدیل نہیں ہونا چاہیے۔ اسے ہر‬
‫حال میں یکساں رہنا چاہیے تو یہ ناسخ و منسوخ کا کیا مطلب ہے؟ یہ سوال ایک غلققط مفروضقے کققی‬
‫بنیاد پر قائم کیا گیا ہے۔ اللہ تعالی نے اپنے دین میں جو احکام نقازل فرمقائے ہیقں ان میقں حقالت کقے‬
‫پیش نظر تدریجی طریقہ اختیار کیا گیا ہے۔ جب قرآن نازل ہو ر ہا ت ھا تققو اللقہ تعققالی نقے احکققام کققو‬
‫تدریجا ً نافذ کیا۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ اچانک احکام نافذ کر دینے کے نتیجے میں بہت سے مسائل پیدا‬
‫ہو جاتے۔ پہلے لوگوں کے ذہنوں کو اللہ تعالی کی اطاعت پر تیار کیا گیققا اور اس کقے بعققد احکققام دیقے‬
‫گئے۔ بعض احکام وقتی نوعیت کے تھے جن کا تعلق مخصوص حالت سے تھا۔ حالت تبدیل ہونے ک قے‬
‫بعد اس حکم کو منسوخ کر دیا گیا۔‬
‫فقہ کی اصطلح میں "منسوخ" ایسے حکم کو کہتے ہیں جس پر عمل کرنے سے منع کر دیا گیا ہو۔‬
‫اس کی جگہ جو نیا حکم نافذ کیا گیا ہو‪ ،‬اسے "ناسخ" یعنی منسوخ کرنے وال کہا جاتا ہے۔‬

‫اللہ تعالی نے اس بات کی وضاحت کر دی ہے کہ اللہ کی کتاب میں دیے گئے حکم کو‬
‫یہ کتاب ہی منسوخ کر سکتی ہے۔ کتاب اللہ کے کسی حکم کو حدیث منسوخ نہیققں کققر‬
‫سکتی کیونکہ وہ کتاب اللہ کے تابع ہے۔ سنت کا دائرہ تققو کتققاب الل قہ ک قے احکامققات کققی‬
‫وضاحت ہی ہے۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ن غَي ْق ِ‬
‫ر‬ ‫ققْرآ ٍ‬ ‫ت بِ ُ‬‫قاَءن َققا ائ ْ ِ‬‫ن لِ َ‬‫جققو َ‬ ‫ن َل ي َْر ُ‬‫ذي َ‬ ‫ل ال ّق ِ‬ ‫ت َقا َ‬‫م آَيات َُنا ب َي َّنا ٍ‬‫ذا ت ُت َْلى عَل َي ْهِ ْ‬ ‫وَإ ِ َ‬
‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫ن أت ّب ِقعُ إ ِّل َ‬
‫مققا‬ ‫سققي؛ إ ِ ْ‬ ‫ف ِ‬ ‫ن ت ِل ْ َ‬
‫قققاِء ن َ ْ‬ ‫مق ْ‬ ‫ه ِ‬‫ن أب َقد ّل َ ُ‬ ‫ن ِلي أ ْ‬ ‫كو ُ‬ ‫ما ي َ ُ‬ ‫ل َ‬‫ه‪ .‬قُ ْ‬ ‫ذا أوْ ب َد ّل ْ ُ‬‫هَ َ‬
‫َ‬
‫ظيم ٍ۔‬ ‫ب ي َوْم ٍ عَ ِ‬ ‫ذا َ‬‫ت َرّبي عَ َ‬ ‫صي ْ ُ‬‫ن عَ َ‬
‫ف إِ ْ‬ ‫خا ُ‬ ‫ي‪ .‬إ ِّني أ َ‬ ‫حى إ ِل َ ّ‬ ‫ُيو َ‬
‫جب انہیں ہماری صاف صاف آیات سنائی جاتی ہیں تو وہ لوگ جو ہم س قے ملن قے کققی‬
‫توقع نہیں رکھتے‪ ،‬کہتے ہیں‪" ،‬اس کی بجائے کققوئی اور ققرآن لؤ یقا اسقی میققں کقوئی‬
‫ترمیم کر لو۔" اے پیغمبر! آپ کہیے‪" ،‬میرا یہ کام نہیقں کقہ میقں اس میقں اپنقی طقرف‬
‫سے کوئی تغیر و تبدل کر لوں۔ میں تو بس اسی وحی کا پیروکار ہوں جو میرے پاس‬
‫بھیجی جاتی ہے۔ اگر میں اپنے رب کی نافرمانی کروں تو مجھے ایک بققڑے ہولنققاک دن‬
‫کے عذاب کا ڈر ہے۔" )یونس ‪( 10:15‬‬
‫یہاں اللہ تعالی نے اپنے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو بتایا ہے کہ آپ کے ذمے وحققی‬
‫الہی کی صرف اتباع ہے اور آپ اپنی طرف سے اس میں کوئی تبدیلی نہیں کر سکتے۔‬
‫ن ت ِل ْ َ‬ ‫كون ِلي أ َ ُ‬
‫سي " یعنی " میرا یہ کققام نہیققں ک قہ‬
‫ف ِ‬
‫قاءِ ن َ ْ‬ ‫م ْ‬ ‫ن أب َد ّل َ ُ‬
‫ه ِ‬ ‫ْ‬ ‫ما ي َ ُ ُ‬
‫اس ارشاد میں کہ " َ‬
‫میں اس میں اپنی طرف سے کوئی تغیر و تبدل کر لوں " وہ بات بیان ہوئی ہے جققس کققا ذکققر‬
‫میں اوپر کر چکا ہوں کہ اللہ کی کتاب کے کسی قانون کو اس کے سوا کوئی اور چیققز‬
‫منسوخ نہیں کر سکتی۔ جیسا کہ صرف اللہ تعالی ہی اپنا حکم جاری کر سکتا ہے اسی‬

‫‪62‬‬
‫طرح یہ بات بھی صرف اسی کے اختیار میں ہے کہ وہ اپنے حکم کو ہمیشہ کے لئے بققاقی‬
‫رکھے )یا منسوخ کر دے(۔ اس کے سوا کسی اور کو یہ اختیار حاصل نہیں۔‬
‫ُ‬
‫ب"‬ ‫م ال ْك ِت َققا ِ‬
‫عن ْقد َهُ أ ّ‬ ‫شققاُء وَي ُث ْب ِق ُ‬
‫ت‪ ،‬وَ ِ‬ ‫ما ي َ َ‬ ‫حو الل ّ ُ‬
‫ه َ‬ ‫م ُ‬
‫اسی طرح اللہ تعالی کا ارشاد ہے" ي َ ْ‬
‫یعنی "اللہ تعالی اپنے احکام میں سے جسے چاہے لے جاتا ہے اور جسے چاہے باقی رکھتا‬
‫ہے اور اسی کے پاس اصل کتاب ہے" اس معاملے میں بعض اہل علم کا یہ موقف ہے کہ‬
‫یہ آیت اس بات کی دلیل ہے کہ رسول اللہ‪ ،‬اللہ تعالی کی اجازت سے اس معاملے میققں‬
‫کوئی قانون سازی کر سکتے ہیں جس میں اللہ تعالی نے کقوئی حکققم نققازل نہیققں کیقا۔‬
‫اس کے اس ارشاد میں کہ "وہ جو چاہے لے جاتا ہے" میں یہ بتایققا گیققا ہے کقہ اللقہ تعققالی‬
‫جس حکم کو چاہے باقی رکھتا ہے اور جسے چاہے منسوخ کر دیتققا ہے۔ الل قہ کققی کتققاب‬
‫میں اس بات کی دلیل یہ ہے‪:‬‬
‫ه عََلقى‬ ‫خير منها أ َو مث ْل ِها‪ .‬أ َل َم تعَلق َ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬
‫ن الّلق َ‬‫مأ ّ‬ ‫ْ َْ ْ‬ ‫ت بِ َ ْ ٍ ِ ْ َ ْ ِ َ‬ ‫سَها ن َأ ِ‬
‫ن آي َةٍ أوْ ُنن ِ‬‫م ْ‬ ‫س ْ‬
‫خ ِ‬ ‫ما َنن َ‬ ‫َ‬
‫ديٌر ۔‬ ‫َ‬
‫يٍء ق ِ‬‫ش ْ‬‫كل َ‬ ‫ّ‬ ‫ُ‬
‫اگر ہم کسی آیت کو منسوخ کر دیں تو ہم اس سے بہتر یا ویسی ہی آیت لے آتے ہیں۔‬
‫کیا تم نہیں جانتے کہ اللہ ہر چیز پر قادر ہے۔ )البقرہ ‪( 106 :2‬‬
‫اللہ تعالی نے یہ بات بتا دی ہے کہ قرآن کے کسی حکم کا نسخ یقا اس کقے کسقی حکقم‬
‫کو موخر کرنا صرف قرآن مجید ہی سے ہو سکتا ہے۔ ارشاد باری تعالی ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫كان آية‪ ،‬والل ّ َ‬
‫ر۔‬
‫فت َ ٍ‬
‫م ْ‬
‫ت ُ‬ ‫ل‪َ :‬قاُلوا‪ :‬إ ِن ّ َ‬
‫ما أن ْ َ‬ ‫ما ي ُن َّز ُ‬ ‫ه أعْل َ ُ‬
‫م بِ َ‬ ‫م َ َ َ ٍ َ ُ‬ ‫ذا ب َد ّل َْنا آي َ ً‬
‫ة َ‬ ‫وَإ ِ َ‬
‫جب ہم ایک آیت کی جگہ دوسری نازل کرتے ہیں اور اللہ ہی یہ بہتر جانتا ہے ک قہ وہ کیققا‬
‫نازل کرے تویہ لوگ کہتے ہیں کہ تم خود قرآن گھڑتے ہو ۔ )النحل ‪(16:101‬‬
‫اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کا معاملہ ہے۔ سنت کققا نسققخ‬
‫سنت رسول ہی سے ہو سکتا ہے۔ اگر کسی معاملے میققں حضققور صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کوئی سنت جاری فرما چکقے ہوں اور اللقہ تعقالی اس معقاملے میقں کقوئی اور‬
‫حکم جاری کرنا چاہے تو آپ اس میں اللہ تعالی کے حکم ہی کی پیروی میں نئی سنت‬
‫جاری فرمائیں گے یہاں تک کہ لوگوں پر واضح ہو جائے گققا ک قہ اس سققنت ن قے اس س قے‬
‫پہلے والی سنت کو منسوخ کر دیا ہے۔ اسی بات کققا ذکققر حضققور صققلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ‬
‫وسلم کی حدیث میں ہے۔‬
‫سائل‪ :‬قرآن کو قرآن سے منسوخ کرنے کی دلیل تققو خققود قققرآن میققں مققل جققاتی ہے‬
‫کیونکہ قرآن بے مثل ہے۔ کیا سنت کے بارے میں بھی ایسی کوئی دلیل ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬جیسا کہ میں نے عرض کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کقے احکققام‬
‫کی اتباع لوگوں پر اللہ نے لزم کی ہے۔ یہ اس بات کی دلیل ہے کہ سنت رسول کو الل قہ‬
‫کے حکم کی حیثیت سے قبول کیا جائے گا۔ جو اس کی پیروی کرتا ہے وہ کتاب اللہ ک قے‬
‫حکم کے تحت ہی ایسا کرتا ہے۔ ہمیں سوائے اللہ کی کتاب اور حضققور صققلی الل قہ علی قہ‬
‫و ٰالہ وسلم کی سنت کے اور تو ایسی کوئی بات نہیں ملتی جسے الل قہ تعققالی ن قے لزم‬
‫کیا ہو۔‬
‫جیسا کہ میں بیان کر چکا ہوں کہ چونکہ کسققی مخلققوق کققا کققوئی قققول سققنت س قے‬
‫مشابہ نہیں ہے اس لئے اس کا نسخ صرف اسی کے مماثل کسی چیز سے ہو سکتا ہے۔‬
‫اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سققنت ک قے علوہ کققوئی چیققز اس‬
‫کے مماثل نہیں ہو سکتی کیونکہ اللہ تعالی نے کسی شخص کو حضققور صققلی الل قہ علی قہ‬
‫و ٰالہ وسلم کی طرح کا نہیں بنایا۔ بلکہ اس نے اپنے بندوں پققر تققو آپ کققی اطققاعت کققو‬

‫‪63‬‬
‫لزم کیا ہے اور آپ کا حکم ماننا ضروری قرار دیا ہے۔ تمققام مخلققوق آپ کققی پیروکققار‬
‫ہے۔ ایک پیروکار کے لئے یہ ممکن نہیں کہ وہ آپ کے حکم سے اختلف کرے۔ جققب سققنت‬
‫رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کا اتباع لزم ہے تو ایسا ممکن ہی نہیققں ہے کقہ کققوئی‬
‫اس میں سے کسی چیز کو منسوخ کر سکے۔‬
‫سائل‪ :‬کیا اس بات کا امکان ہے کہ کوئی منسوخ سنت تو ہم تک منتقققل ہو گئی جبک قہ‬
‫اس کو منسوخ کرنے والی ناسخ سنت منتقل نہ ہو سکی؟‬
‫شافعی‪ :‬اس بات کو کوئی امکان نہیں۔ یہ کیسے ممکن ہے کہ جو چیز فرض نہیں ہے وہ‬
‫تو منتقل ہو جائے جبکہ جو چیققز فققرض کققر دی گئی ہے وہ تققرک کققر دی جققائے؟ کیققا یقہ‬
‫درست ہے کہ ایک ایسی سنت جس پر عام لوگوں کا عمققل ہے‪ ،‬وہ ان ک قے عمققل س قے‬
‫نکل جائے اور وہ کہہ سقکیں‪" ،‬شقاید یقہ منسقوخ ہو گقی؟" کقوئی حکقم اس وققت تقک‬
‫منسوخ نہیں ہوتا جب تک کہ اس کی جگہ دوسرا حکم ن قہ دے دیققا جققائے جیسققا ک قہ بیققت‬
‫المقدس کے قبلے کی منسوخی کی صورت میں ہوا۔ اس کققی جگقہ پققر کعبقہ کققو قبلقہ‬
‫مقرر کیا گیا۔ اسی طرح اللہ کی کتاب اور سققنت رسققول صققلی الل قہ علی قہ و ٰالقہ وسققلم‬
‫دونوں کے ہر منسوخ حکم کا معاملہ ہے )کہ منسوخ ہونے کے بعد ناسخ حکم کققو جققاری‬
‫بھی کیا جائے گا۔(‬
‫سائل‪ :‬کیا سنت کے کسی حکم کو قرآن کے کسی حکققم کقے ذریعقے منسققوخ کققی جققا‬
‫سکتی ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬اگر سنت کو قرآن سے منسوخ کیا جائے‪ ،‬تو رسول الل قہ صققلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ‬
‫وسلم کی ایک اور سنت جاری ہو گی جو یہ واضح کر دے گی کقہ پہلققی سققنت دوسققری‬
‫سے منسوخ ہے یہاں تک کہ انسانوں پر حجت پققوری ہو جققائے کیققونکہ ہر چیققز اس کقے‬
‫مماثل سے ہی منسوخ ہو سکتی ہے۔‬
‫سائل‪ :‬آپ نے جو فرمایا‪ ،‬اس کی دلیل کیا ہے؟‬
‫جواب‪ :‬جیسا کہ میں نے اس کتاب میں متعلقہ مقام پر اللہ تعققالی ک قے احکققام‪ ،‬خققواہ وہ‬
‫خاص ہو یا عام کے بارے میں بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اللہ تعققالی‬
‫کے حکم کے سوا کوئی بات کبھی نہیں کہہ سکتے۔ اگر اللہ تعالی نے کوئی حکم دیققا ہے‬
‫اور وہ اسے منسوخ کر سکتا ہے تو )بالکل اسی طرح( رسول اللہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کی سنت )اللہ کے حکم آ جانے پر( بھی دوسری سنت کو منسوخ کر سکتی ہے۔‬
‫اگر یہ کہنا درست ہو کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ایک سققنت قققائم کققی‬
‫اور پھر قرآن نے اسے منسوخ کر دیا اور اس معاملے میں رسقول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم سے کوئی ناسخ سنت ہمیں نہیں مل سکی تو کہنا بھی درست ہو جققائے گققا‬
‫کہ‪:‬‬
‫•حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے بعض اقسام کی تجارت کو ناجائز قققرار دے‬
‫َ‬
‫م‬ ‫ه ال ْب َي ْقعَ وَ َ‬
‫ح قّر َ‬ ‫ل الل ّق ُ‬
‫حق ّ‬
‫رکھا تھا جسے اللہ تعالی نے اس آیت سے منسوخ کیا " وَأ َ‬
‫الّرَبا " یعنی "اللہ نے تجارت کو حلل کیا ہے اور سود کو حرام۔" )اب اس بنیققاد پققر لیققن‬
‫دین سے متعلق آپ کے احکام اس آیت سے منسوخ ہو گئے۔(‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے بدکاروں کو رجم کیقا اور اس رجقم کقو‬
‫حقدٍ‬ ‫دوا ك ُق ّ‬
‫ل َوا ِ‬ ‫ة َوالّزاِني َفا ْ‬
‫جل ِ ُ‬ ‫اللہ تعالی نے اس آیت سے منسوخ قرار دیا " الّزان ِي َ ُ‬
‫جل ْد َةٍ " یعنی "زانی اور زانیہ میں سے ہر ایک کو سو کوڑے مارو۔"‬ ‫مائ َ َ‬
‫ة َ‬ ‫ما ِ‬
‫من ْهُ َ‬
‫ِ‬
‫• موزوں پر مسح کی سنت کو آیت وضو نے منسوخ کر دیا۔‬

‫‪64‬‬
‫• غیر محفوظ مقام اور ربع دینار سے کم کی چوری کرنے کی صورت میں ب ھی‬
‫سققارِقَ ُ‬
‫ة‬ ‫سارِقُ َوال ّ‬
‫چوری کی سزا دی جائے گی کیونکہ یہ سنت قرآن کی آیت " ال ّ‬
‫َ‬
‫َفاقْط َُعوا أي ْدِي َهُ َ‬
‫ما " یعنی "چور مققرد و عققورت دونققوں ک قے ہاتھ کققاٹ دو۔" سے منسوخ‬
‫سمجھی جائے گی۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ چقوری خقواہ کقم ہو یقا زیقادہ‪ ،‬محفقوظ‬
‫مقام سے کی جائے یا غیر محفوظ مقام سے‪ ،‬ہر حالت میققں چققوری ہی کہلتققی‬
‫ہے۔‬
‫اس طریقے سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے مروی ہر حققدیث کققو‪ ،‬اگققر وہ‬
‫ہمیں بظاہر قرآن کے مطابق نہ لگے‪ ،‬یہ کہہ رد کیا جققا سققکتا ہہہے ک قہ "آپ ن قے ایسققا نہیققں‬
‫فرمایا ہو گا۔" اس طرح سے ان دو بنیادوں پر حدیث کو رد کرنے کو درست سمجھ لیا‬
‫جائے گا‪ :‬ایک تو یہ کہ اگر حدیث کے الفاظ قرآن کے الفاظ سے کچھ مختلف ہوں اگرچہ‬
‫اس کا معنی کتاب اللہ سے موافقت رکھتا ہو )تو اسے رد کر دیا جائے( یا پ ھر اس ک قے‬
‫الفاظ اگر آیت کے الفاظ سے کچھ زیادہ ہوں )تب ب ھی اسقے کققر دیققا جققائے( اگرچقہ ان‬
‫میں معمولی نوعیت کا فرق پایا جائے۔‬
‫اللہ کی کتاب اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کقی سققنت سقے اس رائے‬
‫کے خلف اور جو کچھ ہم نے کہا اس کی موافقت میں استدلل کیا جققا سققکتا ہے۔ الل قہ‬
‫کی کتاب وہ واضح بیان ہے جس کے ذریعے وہ اندھوں کو شفا دیتا ہے۔ اسی کتاب میققں‬
‫قانون اور دین میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ک قے مقققام‪ ،‬آپ ک قے حکققم کققی‬
‫پیروی )کی اہمیت( اور دین کی وضاحت کے بارے میں آپ کی حیثیت کو بیققان کققر دیققا‬
‫گیا ہے۔‬

‫ایس ے ناسخ و منسوخ جن ک ے بار ے میں کتاب الل ہ س ے‬


‫بعض اور حدیث س ے بعض احکام ملت ے ہیں‬
‫ہم نے بعض اہل علم کو یہ کہتے ہوئے سنا کہ اللہ تعالی نے پانچ نمازوں کققو فققرض کرن قے‬
‫سے قبل ایک اور نماز فرض کی تھی چنانچہ اللہ تبارک و تعالی ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫ه أ َوْ ان ْ ُ‬ ‫َ‬
‫ه قَِليًل۔ أوْ زِد ْ عَل َي ْق ِ‬
‫ه‬ ‫من ْق ُ‬
‫ص ِ‬
‫قق ْ‬ ‫ف ُ‬ ‫ل إ ِّل قَِليًل۔ ن ِ ْ‬
‫صق َ‬ ‫م الل ّي ْق َ‬‫ل ۔ قُ ق ْ‬
‫م ُ‬ ‫یا أي َّها ال ْ ُ‬
‫مّز ّ‬
‫قَرآن ت َْرِتيًل۔‬ ‫ل ال ُ‬‫وََرت ّ ْ‬
‫اے چادر اوڑھنے والے! رات کو تھوڑی دیر نماز میں کھڑے رہیے‪ ،‬آدھی رات یا اس سقے‬
‫کچھ کم یا اس سے کچھ زیققادہ کققر لیجیقے اور قققرآن کققو خققوب ٹ ھہر ٹ ھہر کققر پڑھیقے۔‬
‫)المزمل ‪(4-73:1‬‬
‫اس حکم کو اللہ تعالی نے اسی سورت میں اس طرح سے منسوخ کر دیا۔‬
‫ه‪ ،‬وَ َ‬ ‫قو َ‬ ‫م أ َن ّ َ‬
‫ن‬
‫مق ْ‬ ‫ة ِ‬ ‫فق ٌ‬ ‫طائ ِ َ‬ ‫ه وَث ُل ُث َق ُ‬ ‫ف ُ‬‫صق َ‬‫ل وَن ِ ْ‬ ‫ن ث ُل َُثي الل ّي ْق ِ‬ ‫م ْ‬‫م أد َْنى ِ‬ ‫ك تَ ُ ُ‬ ‫ك ي َعْل َ ُ‬‫ن َرب ّ َ‬ ‫إِ ّ‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫ّ‬
‫م‪،‬‬ ‫ُ‬
‫ب عَلي ْك ق ْ‬ ‫َ‬
‫صققوهُ فت َققا َ‬ ‫ح ُ‬ ‫ن تُ ْ‬ ‫ن لق ْ‬ ‫مأ ْ‬ ‫ل َوالن َّهاَر‪ .‬عَل ِ َ‬ ‫قد ُّر اللي ْ َ‬ ‫ه يُ َ‬‫معَك‪َ ،‬والل ُ‬ ‫َ‬ ‫ن َ‬ ‫ذي َ‬‫ال ّ ِ‬
‫َ‬
‫ن‬‫خقُرو َ‬ ‫ضققى َوآ َ‬ ‫مْر َ‬ ‫م َ‬ ‫من ْك ُق ْ‬ ‫ن ِ‬ ‫كو ُ‬ ‫س قي َ ُ‬
‫ن َ‬ ‫مأ ْ‬ ‫ق قَرآن‪ ،‬عَل ِق َ‬ ‫ن ال ُ‬ ‫مق ْ‬ ‫سَر ِ‬ ‫ما ت َي َ ّ‬‫َفاقَْرُءوا َ‬
‫ل‬ ‫ُ‬ ‫ّ‬ ‫ن فَ ْ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬
‫سقِبي ِ‬‫ن ِفقي َ‬ ‫ققات ِلو َ‬ ‫ن يُ َ‬ ‫خقُرو َ‬ ‫ه‪َ ،‬وآ َ‬ ‫ل اللق ِ‬ ‫ض ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ن ِ‬ ‫ض ي َب ْت َُغو َ‬ ‫ن ِفي الْر ِ‬ ‫ضرُِبو َ‬ ‫يَ ْ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫َ‬
‫صلةَ َوآُتوا الّزكاةَ۔‬ ‫موا ال ّ‬ ‫ه‪ ،‬وَأِقي ُ‬ ‫من ْ ُ‬
‫سَر ِ‬ ‫ما ت َي َ ّ‬ ‫الل ّهِ َفاقَْرُءوا َ‬
‫آپ کا رب جانتا ہے کہ آپ کبھی دو تہائی رات‪ ،‬کبھی آدھی رات اور کب ھی ت ہائی رات‬
‫نماز میں گزارتے ہیں اور آپ کے ساتھیوں میں سے بھی ایک گروہ ایسا ہی کرتققا ہے۔‬
‫اللہ تعالی ہی رات اور دن کا حساب رکھتا ہے۔ اسے معلوم ہے کہ آپ اوقات کا صققحیح‬
‫شمار نہیں کر سکتے‪ ،‬اس لئے اس نے آپ پققر مہربققانی فرمققائی۔ اب جتنققا قققرآن ب ھی‬
‫آسانی سے پڑھ سکیں‪ ،‬تلوت کر لیا کریں۔ اسے معلوم ہے ک قہ آپ لوگققوں میققں کچ قھ‬

‫‪65‬‬
‫مریض ہوں گے اور کچھ اللہ کا فضل )یعنی رزق( تلش کرنے کے لئے زمین میں ب ھاگ‬
‫دوڑ کرتے ہوں گے اور کچھ اللقہ کققی راہ میققں جنققگ کرتقے ہوں گقے۔ پققس جتنققا قققرآن‬
‫باآسانی پڑھا جا سکے‪ ،‬پڑھ لیا کریں‪ ،‬نماز قائم کریں اور زکوۃ دیں۔ )المزمل ‪(73:20‬‬
‫اللہ تعالی نے پہلے یہ حکم دیا کہ آپ رات کے نصف یا اس سے کچھ کم و بیش حصے کو‬
‫نماز میں گزاریے اور پھر یہ فرمایا کہ " آپ کب ھی دو ت ہائی رات‪ ،‬کب ھی آد ھی رات اور کب ھی‬
‫تہائی رات نماز میں گزارتے ہیں اور آپ کے ساتھیوں میں سے بھی ایققک گققروہ ایسققا ہی کرتققا ہے "۔‬
‫اس کے بعد اس میں اس میں یہ کہتے ہوئے تخفیف فرما دی کہ " اسققے معلققوم ہے کققہ آپ‬
‫لوگوں میں کچھ مریض ہوں گے اور کچھ اللہ کا فضققل )یعنققی رزق( تلش کرن قے ک قے لئے زمیققن میققں‬
‫بھاگ دوڑ کرتے ہوں گے اور کچھ اللہ کی راہ میں جنگ کرتے ہوں گے۔ پس جتنا قرآن باآسانی پڑھا جققا‬
‫سکے‪ ،‬پڑھ لیا کریں۔" اس طرح سے الل قہ تعققالی ن قے قققرآن مجیققد میققں " پققس جتنققا قققرآن‬
‫باآسانی پڑھا جا سکے‪ ،‬پڑھ لیا کریں " کے الفاظ سے نصف رات یا اس سے کم و بیققش کقے‬
‫قیام کو منسوخ فرما دیا۔‬
‫اللہ تعالی کے اس ارشاد " پس جتنا قرآن باآسانی پڑھا جا سققکے‪ ،‬پققڑھ لیققا کریققں " میں دو‬
‫احتمال ممکن ہو سکتے ہیں‪ :‬ایک تو یہ کہ یہ لزمی فرض ہے جس نے اس سے پہلے والے‬
‫فرض کو منسوخ کر دیا۔ دوسرا احتمال یہ ہو سکتا تھا کہ ی قہ بققذات خققود ایققک منسققوخ‬
‫حکم ہے جو کہ کسی اور )تیسرے( حکم سے اسی طرح منسوخ ہو چکققا ہے جیسققا ک قہ‬
‫اس نے پہلے حکم کو منسوخ کر دیا۔ اس حکم کو منسوخ کرنے وال حکم یہ ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫ة لَ َ‬
‫جد ْ ب ِهِ َنافِل َ ً‬
‫دا ۔‬
‫مو ً‬
‫ح ُ‬
‫م ْ‬
‫ما َ‬
‫قا ً‬
‫م َ‬ ‫ك َرب ّ َ‬
‫ك َ‬ ‫ن ي َب ْعَث َ َ‬
‫سى أ ْ‬
‫ك عَ َ‬ ‫ن الل ّي ْ ِ‬
‫ل فَت َهَ ّ‬ ‫م ْ‬
‫وَ ِ‬
‫رات کو تہجد پڑھیے‪ ،‬یہ آپ کے لئے اضافی حکم ہے تاکہ آپ کا رب آپ کو مقام محمود‬
‫پر پہنچا دے۔ )بنی اسرائیل ‪(17:79‬‬
‫اس حکم میں کہ "رات کو تہجد پڑھیے‪ ،‬یہ آپ کے لئے اضافی حکم ہے" میں یقہ احتمققال ممکققن‬
‫تھا کہ تہجد کی نماز باآسانی قرآن پڑھ لینے کے علوہ ایک مزید فققرض ہے۔ اب ی قہ بققات‬
‫ضروری ہو گئی ہے کہ ہم اس معاملے میں ایک متعین معنی اختیار کرنے کے لئے رسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کی طرف رجوع کریں۔ رسققول الل قہ صققلی الل قہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت سے ہمیں یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ صرف پانچ نمازیں ہی ہم‬
‫پر فرض کی گئی ہیں۔ اس سے پہلے جو نماز بھی ہم پقر لزم ت ھی‪ ،‬وہ اب منسقوخ ہو‬
‫چکی ہے۔ اس معاملے میں ہم اللہ تعالی کے اس ارشاد " تہجد پڑھیے‪ ،‬یہ آپ کقے لئے اضققافی‬
‫حکم ہے" سے استدلل کرتے ہیں۔ اس حکم نے رات کے نصف یا تہائی قیام یققا جققو کچ قھ‬
‫باآسانی میسر ہو سکے کے حکم کو منسوخ کر دیا ہے۔‬
‫نوٹ‪ :‬تہجد کی نماز کقو رسقول اللقہ صقلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسقلم پقر فققرض ققرار دیققا گیققا جبکقہ عقام‬
‫مسلمانوں پر بھی ابتدا میں اسے فرض قرار دیا گیا اور اس کے بعد اس فرضیت کو منسوخ کر کققے‬
‫اسے نفل کی حیثیت سے برقرار رکھا گیا۔‬

‫اس بحث کا یہ مطلب ہرگز نہیں ہے کہ ہم تہجققد کققی نمققاز کققو اپنققی اسققتطاعت ک قے‬
‫مطابق ادا کرنے کو پسند نہیں کرتے ہیں۔ جو بھی جتنا زیادہ یہ عمل کر سکے وہ ہمققارے‬
‫نزدیک )بحیثیت نفل( ایک پسندیدہ عمل ہے۔ )صرف پانچ نمققازیں فققرض ہیققں اور تہجققد‬
‫نفل‪ ،‬احادیث سے بھی یہی معلوم ہوتا ہے۔(‬
‫مالک اپنے چچا ابو سہیل بن مالک سے اور وہ اپنے والد سے روایت کرتے ہیں ک قہ ان ہوں‬
‫نے طلحۃ بن عبید اللہ رضی اللہ عنہ کققو کہتقے سققنا‪ :‬ا ہل نجققد میقں سقے ایقک پرجقوش‬
‫دیہاتی آیا‪ ،‬جس کی آواز بھی ہم سن نہ پا رہے تھے اور نہ یہ سمجھ پا رہے تھے کہ وہ کیققا‬
‫کہہ رہا ہے۔ یہاں تک کہ وہ حضور کے قریب آ گیا اور اسلم کے بققارے میققں سققوال کرنقے‬
‫لگا۔‬

‫‪66‬‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬دن و رات میں پانققچ نمققازیں تققم پققر فققرض‬
‫کی گئی ہیں۔"‬
‫بول‪" ،‬کیا اس کے علوہ کچھ اور بھی ہے؟"‬
‫فرمایا‪" ،‬نہیں۔ ہاں اگر تم اپنی مرضی سے اضافہ کرنا چاہو تو کوئی حرج نہیں۔"‬
‫اس کے بعد حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ماہ رمضان کے روزوں کا ذکققر فرمایققا‬
‫تو وہ کہنے لگا‪" ،‬کیا اس کے علوہ اور بھی کچھ ہے؟"‬
‫آپ نے فرمایا‪" ،‬نہیں سوائے اس کے کہ تم اپنی مرضی سے زیادہ کر لو۔"‬
‫وہ شخص واپس گیا اور کہہ رہا تھا‪" ،‬میں نقہ تقو اس میقں اضقافہ کقروں گقا اور نقہ ہی‬
‫کمی۔" رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم نقے فرمایققا‪" ،‬اگققر یقہ سققچ ک ہہ ر ہا ہے تققو‬
‫کامیاب ہو گیا۔" )بخاری‪ ،‬مسلم‪ ،‬نسائی(‬
‫عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کقہ نقبی صقلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسقلم نقے‬
‫فرمایا‪" ،‬اللہ تعالی نے اپنے بندوں پر پانچ نمازیں فرض کققی ہیققں۔ جققو ب ھی انہیققں اس‬
‫طرح سے ادا کرتا ہے کہ ان میں سے کچھ نہ تو ضائع کرتا ہے اور نہ ہی کم تو اللہ تعالی‬
‫کا وعدہ ہے کہ وہ اسے جنت میں داخل فرما دے۔" )نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ابن ماجہ‪ ،‬احمد(‬

‫نسخ کی دیگر مثالیں‬


‫عذر کے باعث نماز نہ پڑھنے کا حکم‬
‫اللہ تبارک و تعالی ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫ض وََل‬
‫حي ق ِ‬ ‫م ِ‬ ‫سققاَء فِققي ال ْ َ‬ ‫ذى َفاعْت َزُِلوا الن ّ َ‬‫ل‪ :‬هُوَ أ َ ً‬ ‫ض؟ قُ ْ‬ ‫ِ‬ ‫حي‬
‫م ِ‬‫ن ال ْ َ‬
‫ْ‬ ‫ك عَ‬‫سأ َُلون َ َ‬‫وَي َ ْ‬
‫هّ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬
‫ن الل َ‬
‫ه‪ .‬إ ِ ّ‬‫م الل ُ‬ ‫مَرك ُ ْ‬
‫ثأ َ‬‫حي ْ ُ‬
‫ن َ‬ ‫م ْ‬
‫ن ِ‬ ‫ن فَأُتوهُ ّ‬‫ذا ت َطهّْر َ‬ ‫ن‪ ،‬فَإ ِ َ‬ ‫حّتى ي َطهُْر َ‬ ‫ن َ‬ ‫قَرُبوهُ ّ‬ ‫تَ ْ‬
‫ن۔‬
‫ري َ‬‫مت َط َهّ ِ‬ ‫ب ال ْ ُ‬‫ح ّ‬ ‫ن‪ ،‬وَي ُ ِ‬‫واِبي َ‬
‫ب الت ّ ّ‬ ‫ح ّ‬‫يُ ِ‬
‫یہ آپ سے حیض کی حالت کے بارے میں پوچھتے ہیں‪ ،‬آپ کہیقے‪" ،‬وہ اذیققت کققی حققالت‬
‫ہے‪ ،‬اس میں خواتین سے الگ رہو اور ان کے قریب اس وقت تک نہ جاؤ جب تک کہ وہ‬
‫پاک صاف نہ ہو جائیں۔ پھر جب وہ پاک ہو جائیں تو ان سقے اس طققرح سقے ازدواجققی‬
‫تعلقات قائم کرو جیسا کہ اللہ نے تمہیں حکم دیا ہے۔" اللہ ان لوگوں کو پسند کرتققا ہے‬
‫جو بدی سے باز رہیں اور پاکیزگی اختیار کریں۔ )البقرۃ ‪(2:222‬‬
‫اللہ تعالی نے نماز پڑھنے والے پر وضو اور جنابت کی صورت میں غسققل کقے ذریعقے‬
‫طہارت لزم کی ہے۔ اس کے بغیر نماز ادا کرنققا جققائز نہیققں۔ اللقہ تعققالی نقے حیققض کقے‬
‫حالت کے بارے میں بیان کیا ہے کہ خواتین کے پاک ہونے تک ان سے دور رہا جققائے۔ جققب‬
‫وہ پاک ہو جائیں تو ان کے پاس آنا جائز ہے۔ اس سے ہم یہ بات اخذ کر سکتے ہیں کقہ وہ‬
‫حیض کے خاتمے پر پانی سے غسل کر کے پاک ہوں کیونکہ عام طور پر شہروں میں تو‬
‫پانی ہر حال میں دستیاب ہوتا ہی ہے۔ حالت حیض کے دوران غسل کرنے سے وہ پاک نہ‬
‫ہوں گی کیونکہ اللہ تعالی نے اپنی کتاب اور اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم کققی‬
‫سنت میں )غسل کے ذریعے( پاک ہونے کا حکم حیض کے ختم ہونے پر دیا ہے۔‬
‫مالک‪ ،‬عبدالرح ٰمن بن قاسم سے اور وہ اپنے والد سے اور وہ سیدتنا عائشہ رضققی اللققہ‬
‫عنہا سے روایت کرتے ہیں کہ سیدہ عائشہ حالت احقرام میقں نققبی صقلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کے ساتھ تھیں جب آپ حالت حیض سے دوچار ہوئیں۔ حضور نے انہیں حکم دیققا‬
‫کہ وہ دوسرے حاجیوں کی طرح حج کے تقاضے پورے کریں سوائے اس ک قے ک قہ وہ پققاک‬
‫ہونے تک بیت اللہ کا طواف نہ کریں۔ )بخاری‪ ،‬مسلم‪ ،‬احمد‪ ،‬مالک(‬
‫اس سے ہم یہ اخذ کر سکتے ہیں کہ اللہ تعالی نے نماز کو اس شخص پر لزم کیا ہے‬
‫جو وضو یا غسل کے ذریعے طہارت حاصل کر لے۔ ج ہاں تققک کسققی حائضقہ خققاتون کققا‬

‫‪67‬‬
‫تعلق ہے تو وہ حالت حیض میں وضو یا غسل کر کے پاک نہیں ہو سکتی۔ حیض تو ایققک‬
‫قدرتی عمل ہے اور خاتون کا اس پر کوئی اختیار ب ھی نہیققں ہے ک قہ وہ اس ک قے بققاعث‬
‫)نماز چھوڑنے پر( گناہ گار ہو۔ اسی وجہ سے حیض کے ایام میں انہیققں نمققاز کقے فققرض‬
‫سے مستثنی کر دیا گیا ہے اور ان کے لئے یہ ضققروری نہیققں کقہ حیقض کقے خقاتمے پققر وہ‬
‫چھوڑی ہوئی نمازوں کی قضا ادا کریں۔‬
‫حائضہ خاتون کے بارے میں اس وضاحت کی بنیاد پر ہم ذہنی معذور شخص کو ب ھی‬
‫قیاس کر سکتے ہیں۔ اس پر یہ بیماری اللہ تعالی کی جانب سے آئی ہے جس میققں اس‬
‫کا کوئی قصور نہیں۔ اسی وجہ سے جب تک وہ ذہنی طور پر معققذور ر ہے اور اس کققی‬
‫عقل لوٹ کر نہ آئے‪ ،‬اسے نماز معاف کر دی گئی ہے۔‬
‫یہ بات اہل علم میں عام ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم نقے حائضقہ خققواتین کققو‬
‫نماز قضا کرنے کا حکم تو نہیں دیا البتہ انہیں روزے کی قضا کرنے کا حکم دیا ہے۔ اسی‬
‫وجہ سے ہم ان دونوں فرائض میں فرق کرتے ہیں۔ جیسا کہ میں نے بیان کیا کہ اسے ہم‬
‫اہل علم کے منتقل کرنے اور ان کے اجماع سے اخذ کرتے ہیں۔‬
‫روزے اور نماز میں ایک فرق یہ بھی ہے کہ مسافر رمضان کے روزے میققں تققاخیر کققر‬
‫سکتا ہے لیکن اس کے لئے نماز میں ایک دن کی تاخیر کرنا بھی منع ہے۔ روزے تققو بققارہ‬
‫مہینوں میں سے صرف ایک مہینے میں ادا کئے جاتے ہیں اور گیارہ مہینے اس فرض کققے‬
‫بغیر ہوتے ہیں جبکہ ایسے شخص کے لئے جو نماز کی طاقت رکھتا ہو ایک دن بھی نماز‬
‫سے خالی نہیں ہو سکتا۔‬
‫نشے کے باعث نماز نہ پڑھنے کا حکم‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫جن ُب ًققا إ ِّل عَققاب ِ ِ‬
‫ري‬ ‫ن‪ ،‬وََل ُ‬
‫قوُلو َ‬
‫ما ت َ ُ‬ ‫حّتى ت َعْل َ ُ‬
‫موا َ‬ ‫س َ‬
‫كاَرى َ‬ ‫صَلةَ وَأن ْت ُ ْ‬
‫م ُ‬ ‫قَرُبوا ال ّ‬‫َل ت َ ْ‬
‫سُلوا ۔‬ ‫حّتى ت َغْت َ ِ‬
‫ل َ‬‫سِبي ٍ‬ ‫َ‬
‫نشے کی حالت میں نماز کے قریب مت جاؤ یہاں تک کہ تققم جققو کہتقے ہو وہ سققمجھنے‬
‫لگو۔ اور اسی طرح جنابت کی حالت میں بھی نمقاز کقے قریقب نقہ جقاؤ جقب تقک کقہ‬
‫غسل نہ کر لو۔ )یہ حکم اس شخص کے لئے نہیں ہے( جققو )مسققجد سقے بطققور( راسققتہ‬
‫گزرنے وال ہو۔ )النساء ‪(4:43‬‬
‫بعض اہل علم کا نقطہ نظر یہ ہے کہ یہ آیت شراب کی حرمت سے پہلے نازل ہوئی )اور‬
‫وہ اسے منسوخ سمجھتے ہیں۔( قرآن مجید نے یہ حکم دیا ہے کہ کوئی شخص بھی نشے‬
‫کی حالت میں نماز نہ پڑھے یہاں تک کہ وہ جو کچھ کہہ رہا ہے اسے سمجھنے کے قابل ہو‬
‫جائے۔ ایسے شخص کو نماز سے روکنے کے بعد اس شخص کو بھی نماز سے روکقا گیقا‬
‫ہے جو حالت جنابت میں ہو۔ اہل علم کا اس بات میں کوئی اختلف نہیں ہہہے کقہ کققوئی‬
‫شخص حالت جنابت میں نماز نہ پڑھے۔اسے ایسا غسل کرنے کے بعد کرنا چاہیے۔‬
‫نشے کی حالت میں نماز سے روکنے کو اگر شراب کی حرمت سے پہلے کققے زمققانے‬
‫کا حکم بھی مان لیا جائے‪ ،‬تب اس وقت جب کہ شراب حرام ہو چکی ہے تققو یقہ حکققم‬
‫مزید اہمیت اختیار کر جاتا ہے۔ اس پر عمل نہ کرنے وال )یعنققی نشقے کققی حققالت میققں‬
‫نماز پڑھے وال( دو وجوہات سے گناہ گار ہوتا ہے۔ ایک تو یہ کہ وہ نش قے کققی حققالت میققں‬
‫نماز پڑھی ہے اور دوسرا یہ کہ اس نے شراب پی ہے۔‬
‫چونکہ نماز قول‪ ،‬فعل اور )ایسے کاموں سے جن کققی نمققاز میققں اجققازت نہیققں ہے(‬
‫رکنے کا نام ہے اس وجہ سے اس شخص کی نماز نہیں ہے جو )نشے ک قے بققاعث( قققول‪،‬‬

‫‪68‬‬
‫فعل اور رکنے کی عقل نہیں رکھتا۔ جو شخص اللہ تعالی کے حکم کے مطابق نمققاز ادا‬
‫نہیں کر سکتا تو یہ اس کے لئے جائز ہی نہیں ہے۔ جب بھی اسے افاقہ ہو تو اس پر قضا‬
‫نماز کی ادائیگی لزم ہے۔‬
‫ہمیں نشہ کرنے والے اور ذہنی معذور شخص میں فرق کرنا چاہیے۔ ذہنی معذور کققی‬
‫عقل تو اللہ تعالی کے حکم سے سلب ہوئی ہے جس میں اس کے ارادے کا کوئی عمققل‬
‫دخل نہیں جبکہ نشہ کرنے وال خود نشے کی حالت میں گیا ہے۔ اسی وجہ سے نشہ کرنے‬
‫والے پر نماز کی قضاء کرنا لزم ہے جبکہ ذہنی معذور پر قضققا نمققاز کققی ادائیگققی لزم‬
‫نہیں کیونکہ اس نے جان بوجھ کر اپنی مرضی سے اللہ تعالی کی نافرمانی نہیں کی۔‬
‫قبلے کی تبدیلی‬
‫اسی طرح اللہ تعالی نے اپنے رسققول صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققو نمققاز میققں بیققت‬
‫المقدس )یروشلم( کی طرف رخ کرنے کا حکم دیا۔ اس حکم کقے منسققوخ ہونے سقے‬
‫قبل کسی اور جانب رخ کرنے کی اجققازت نقہ ت ھی۔ اس کقے بعققد اللقہ تعققالی نقے بیققت‬
‫المقدس کی طرف منہ کرنے کا حکم منسوخ کر دیا اور بیت الحرام )مکہ( کی طققرف‬
‫رخ کرنے کا حکم دیا۔ اب کسی شخص کے لئے یہ جائز نہیں ہے کہ وہ اس حکم کققے آنققے‬
‫کے بعد بیت المقدس کی طرف منہ کر کے نماز ادا کرتا رہے اور نہ ہی یہ جائز ہے کققہ وہ‬
‫کسی اور سمت کی طرف رخ کر کے نماز ادا کرے۔‬
‫یہ سب احکام اپنے اپنے وقت پر درست تھے۔ جب اللہ تعالی نے اپنقے نققبی صققلی اللقہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کو بیت المقدس کی طرف رخ کرنے کا حکم دیا تققو ی ہی درسققت ت ھا۔‬
‫اس کے بعد جب اس حکم کو اس نے منسوخ کر دیا تو اب درست صققرف ی ہی ہے کقہ‬
‫بیت اللہ کی طرف منہ کر کے نماز ادا کی جائے۔ کتاب و سنت سے استدلل کرتے ہوئے‬
‫ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ فرض نماز میں کسی اور جانب رخ کرنا اب جققائز نہیققں سققوائے‬
‫اس کے کہ دشمن کے حملے کا خطرہ ہو یا پھر سفر میں نفل نمققاز ادا کرتقے ہوئے اس‬
‫کی اجازت ہے کہ جس طرف ممکن ہو‪ ،‬منہ کر کے نماز ادا کی جائے۔‬
‫اسی طرح ہر اس حکم کا معاملہ ہے جسے اللہ تعالی نے منسوخ قرار دے دیققا۔ نسقخ‬
‫کا مطلب یہ ہے کہ کسی حکم پر عمل کرنا ختم کر دیا جائے۔ اس حکم پققر عمققل کرنققا‬
‫اپنے وقت میں بالکل درست تھا اور جب اللہ تعالی نے اسے منسوخ کر دیا تو اب اسے‬
‫ترک کر دینا ہی درست ہے۔ جو شخص بھی کسی حکم کے منسوخ ہونے س قے آگققاہ ہو‬
‫جائے تو اس پر لزم ہے کہ وہ منسوخ حکم پر عمل چھوڑ دے اور ناسخ پر عمل شققروع‬
‫کر دے۔ جو شخص اس بات سے بے خبر رہا وہ بے شققک اسققی منسققوخ حکققم پققر عمققل‬
‫کرتا رہے۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫جهَق َ‬
‫ك‬ ‫ها‪ ،‬فَقوَ ّ‬
‫ل وَ ْ‬ ‫ضققا َ‬ ‫ك قِب ْل َق ً‬
‫ة ت َْر َ‬ ‫ماِء‪ ،‬فَل َن ُوَل ّي َن ّق َ‬‫سق َ‬
‫ك ِفقي ال ّ‬ ‫جهِ َ‬ ‫ب وَ ْ‬‫قل ّ َ‬
‫قَد ْ ن ََرى ت َ َ‬
‫ْ‬
‫شطَرهُ ۔‬ ‫م َ‬ ‫جوهَك ُ ْ‬ ‫ّ‬
‫م فَوَلوا وُ ُ‬ ‫ما ُ‬
‫كنت ُ ْ‬ ‫ث َ‬‫حي ْ ُ‬
‫م‪ ،‬وَ َ‬ ‫ْ‬ ‫شط َْر ال ْ َ‬ ‫َ‬
‫حَرا ِ‬
‫جدِ ال َ‬ ‫س ِ‬‫م ْ‬
‫یہ تمہارے چہرے کا آسمان کی طرف بار بار اٹھنا ہم دیکھ رہے ہیں۔ لو ہم تمہیققں اسققی‬
‫قبلے کی طرف پھیر دیتے ہیں‪ ،‬جسے تم پسند کرتے ہو۔ اپنے چہرے کققو مسققجد الحققرام‬
‫کی طرف پھیر لو اور جہاں کہیں بھی تم ہو‪ ،‬اسی کی طرف منہ کر کے نماز ادا کرو۔‬
‫)البقرہ ‪(2:144‬‬
‫کوئی یہ کہہ سکتا ہے کہ قبلے کی تبدیلی کا حکم کہاں بیان کیا گیا ہے؟‬
‫كاُنوا عَل َي َْهققا؟ ُققق ْ‬
‫ل‪:‬‬ ‫م ال ِّتي َ‬
‫ن قِب ْل َت ِهِ ْ‬ ‫ما وَّلهُ ْ‬
‫م عَ ْ‬ ‫س‪َ :‬‬‫ن الّنا ِ‬ ‫م ْ‬‫فَهاُء ِ‬ ‫س َ‬ ‫قو ُ‬
‫ل ال ّ‬ ‫سي َ ُ‬
‫َ‬
‫قيم ٍ ۔‬
‫ست َ ِ‬
‫م ْ‬
‫ط ُ‬‫صَرا ٍ‬ ‫َ‬
‫شاُء إ ِلى ِ‬ ‫ن يَ َ‬
‫م ْ‬
‫دي َ‬‫ب‪ .‬ي َهْ ِ‬
‫مغْرِ ُ‬ ‫ْ‬
‫شرِقُ َوال َ‬‫م ْ‬‫ل ِل ّهِ ال َ‬
‫ْ‬

‫‪69‬‬
‫نادان لوگ ضرور کہیں گے‪" :‬انہیں کیا ہوا‪ ،‬پہلے یہ جس قبلے کی طرف منہ کر کے نماز‬
‫پڑھتے تھے‪ ،‬یکایک اس سے پھر گئے؟" آپ ان سے کہیے‪" :‬مشرق و مغرب تققو الل قہ ہی‬
‫کے لئے ہے۔ وہ جسے چاہتا ہے سیدھے راستے کی طققرف ہدایت دے دیتققا ہے۔" )البقققرۃ‬
‫‪(2:142‬‬
‫مالک‪ ،‬عبداللہ بن دینار سے اور وہ ابن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت کرتے ہیققں‪ :‬ہم‬
‫لوگ قبا میں فجر کی نماز ادا کر رہے تھے جب ایک پیغام لن قے وال آیققا اور کہن قے لگققا‪،‬‬
‫"رات کو نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر وحی نازل ہوئی ہے اور آپ کو حکم دیا گیا ہے کہ‬
‫آپ قبلے کو تبدیل کر لیں تو آپ نے ایسا کر لیا ہے۔" لوگقوں کقے منقہ اس وققت شقام‬
‫)شمال( کی طرف تھے جنہیں انہوں نقے )یقہ حکقم سقننے کقے بعقد( منقہ پھیقر کقر کعبقہ‬
‫)جنوب( کی جانب کر لیا۔ )بخاری‪ ،‬نسائی(‬
‫مالک‪ ،‬یحیی بن سعید سے اور وہ سعید بن مسیب سے روایت کرت قے ہیققں ک قہ‪ :‬رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سولہ مہینے بیت المقدس کی طققرف رخ کققر ک قے نمققاز ادا‬
‫کی۔ اس کے بعد جنگ بدر سے دو ماہ قبل قبلے کو تبدیل کر دیا گیا۔ )بخاری‪ ،‬نسققائی‪،‬‬
‫ابن ماجہ‪ ،‬مالک‪ ،‬احمد(‬
‫خطرے کی حالت میں نماز پڑھنے کے بارے میں حکم قققرآن مجیققد کققی اس آیققت میققں‬
‫َ‬
‫جاًل أوْ ُرك َْباًنا " یعنی "خطرے کی حالت میں خواہ پیققدل ہو یققا سققوار‪،‬‬
‫م فَرِ َ‬
‫فت ُ ْ‬
‫خ ْ‬ ‫ملتا ہے‪ " ،‬فَإ ِ ْ‬
‫ن ِ‬
‫)نماز پڑھو(۔" اس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ خوف کی حالت ک قے سققوا کسققی اور صققورت‬
‫میں جانور پر سوار کے لئے فرض نماز ادا کرنا جائز نہیں۔ اللہ تعالی نے یہاں قبل قے کققی‬
‫طرف منہ کرنے کا ذکر نہیں کیا۔ ابن عمر رضی اللہ عنہما ن قے خطققرے کققی حققالت کققی‬
‫نماز سے متعلق رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے روایت کی ہے‪ ،‬آپ نے فرمایا‪:‬‬
‫اگر خطرے کی حالت شدید ہو جائے تو تم لوگ پیدل یا سوار جیسے بھی ممکن ہو تم‬
‫نماز ادا کرو خواہ منہ قبلے کی طرف ہو یا نہ ہو۔ )بخاری‪ ،‬مالک(‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے نفل نمازیں اپنی اونٹنی پر ادا فرمققائیں اور آپ‬
‫کا رخ اس جانب تھا جدھر اونٹنی سفر کر رہی تھی۔ اس حدیث کو جققابر بققن عبققداللہ‪،‬‬
‫انس بن مالک اور دیگر صحابہ رضی اللہ عنہم نے روایت کیا ہے۔ حضور صقلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے ہمیشہ فرض نماز زمین پر کھڑے ہو کر قبلے کی طرف رخ کر کے ہی ادا‬
‫کی ہیں۔‬
‫ابن ابی فدیک‪ ،‬ابن ابی ذئب سے‪ ،‬وہ عثمان بن عبداللہ سے‪ ،‬وہ سراقہ سے اور وہ جابر‬
‫بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں‪" :‬نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غققزوہ‬
‫بنی انمار کے دوران اپنے اونٹ پر ہی مشققرق کققی جققانب منقہ کققر کقے نمققاز ادا کققی۔‬
‫)مسند شافعی‪ ،‬مسند ابی حنیفہ(‬

‫نوٹ‪ :‬اس موضوع پر دور جدید میں ایک دلچسپ بحث پیدا ہو گئی ہے کہ کققار‪ ،‬بققس‪ ،‬ریققل اور ہوائی‬
‫جہاز میں نماز کیسے ادا کی جائے گی؟ بعض اہل علم جانور کی سواری پر قیاس کرتے ہوئے ی قہ کہت قے‬
‫ہیں کہ ان سواریوں پر نماز کی اجازت نہیں ہے بلکہ ہر صورت میں ان سے اتققر کققر ہہہی نمققاز ادا کققی‬
‫جائے۔ ٹرانسپورٹ کے موجودہ نظام میں اس نقطہ نظر کے حققاملین کققو کققافی مسققائل پیققش آ جققاتے‬
‫ہیں۔ اہل علم کا دوسرا گروہ ان سواریوں کو کشتی پر قیاس کرتے ہوئے اس بات کو جائز قققرار دیتققا‬
‫ہے کہ ان سواریوں میں جدھر بھی رخ ہو سکے‪ ،‬کھڑے ہو کر یا بیٹھے بیٹھے جیسے بھی ممکن ہو‪ ،‬نمققاز‬
‫ادا کی جائے۔‬
‫امام شافعی کی بیان کردہ حدیث کے علوہ بعض ایسی روایات بھی ملتی ہیں جن میں رسول اللہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے زمین پر کیچڑ کے باعث اپنے جانور پر ہی فرض نماز بھی ادا فرمائی ہے۔‬
‫اگر محض کیچڑ کے باعث سواری پر نماز ادا کی جا سکتی ہے تقو پ ھر اس سقے کہیقں بقڑے مسقائل‬
‫جیسے ٹرین چھوٹ جانے وغیرہ کی صورت میں یہ اجازت بدرجہ اولی حاصل ہو گی۔‬

‫جہاد میں ثابت قدم رہنے کا حکم‬

‫‪70‬‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫ن‬‫صاب ُِرو َ‬‫نَ َ‬ ‫شُرو َ‬ ‫ع ْ‬‫م ِ‬‫من ْك ُ ْ‬
‫ن ِ‬ ‫ن ي َك ُ ْ‬
‫ل‪ ،‬إ ِ ْ‬ ‫قَتا ِ‬‫ن عََلى ال ْ ِ‬ ‫مِني َ‬ ‫مؤْ ِ‬‫ض ال ْ ُ‬‫حّر ْ‬ ‫ي َ‬ ‫َيا أي َّها الن ّب ِ ّ‬
‫م قَقوْ ٌ‬
‫م‬ ‫ن كَ َ‬
‫فُروا ب ِقأن ّهُ ْ‬ ‫ذي َ‬ ‫ن ال ّ ِ‬‫م ْ‬‫فا ِ‬ ‫ة ي َغْل ُِبوا أ َل ْ ً‬
‫مائ َ ٌ‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫م ِ‬ ‫ن ِ‬ ‫ن ي َك ُ ْ‬ ‫مائ َت َي ْ ِ‬
‫ن‪ ،‬وَإ ِ ْ‬ ‫ي َغْل ُِبوا ِ‬
‫ن۔‬ ‫قُهو َ‬ ‫َل ي َ ْ‬
‫ف َ‬
‫اے نبی! مومنوں کو جنگ کی ترغیب دیجیے۔ اگر تم میں سقے بیققس ب ھی صققبر کرنقے‬
‫والے ہوں گے تو وہ دو سو پر غالب آئیں گے اور اگر ان میں سے سو ایسے ہوں گے تققو‬
‫وہ اہل کفر کے ہزار آدمیوں پر بھاری رہیں گے کیققونکہ وہ )کفققار( ایس قے لققوگ ہیققں جققو‬
‫سمجھ بوجھ نہیں رکھتے۔ )النفال ‪(8:65‬‬
‫اس کے بعد اللہ تعالی نے وضاحت کر دی کہ اس نے دس افراد کا مقابلہ کرن قے ک قے لئے‬
‫ایک فرد کو ثابت قدم رہنے کی ذمہ داری ختم کر دی ہے اور اب یہ حکم دیا ہے کققہ اگققر‬
‫دشمن کی تعداد دوگنا ہو تو اس کے مقابلے میققں ثققابت قققدم ر ہا جققائے۔ ارشققاد بققاری‬
‫تعالی ہے‪:‬‬
‫عنك ُم‪ ،‬وعَل ِ َ‬
‫صققاب َِرةٌ‬
‫ة َ‬ ‫مققائ َ ٌ‬
‫م ِ‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫ن ِ‬ ‫ن ي َك ُ ْ‬
‫فا‪ ،‬فَإ ِ ْ‬‫ضع ْ ً‬ ‫م َ‬ ‫ن ِفيك ُ ْ‬‫مأ ّ‬ ‫َ‬ ‫ه َ ْ َ‬ ‫ف الل ّ ُ‬ ‫ف َ‬ ‫خ ّ‬ ‫ن َ‬ ‫اْل َ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫ع‬
‫مق َ‬
‫ه َ‬ ‫ه‪َ ،‬والل ّق ُ‬ ‫ن الل ّق ِ‬ ‫ن ِبقإ ِذ ْ ِ‬ ‫ف ي َغْل ِب ُققوا أل ْ َ‬
‫في ْق ِ‬ ‫م أل ْق ٌ‬ ‫من ْك ُق ْ‬ ‫ن ي َك ُق ْ‬
‫ن ِ‬ ‫ن‪ ،‬وَإ ِ ْ‬ ‫مققائ َت َي ْ ِ‬‫ي َغْل ُِبوا ِ‬
‫ن۔‬
‫ري َ‬ ‫صاب ِ ِ‬‫ال ّ‬
‫اچھا‪ ،‬اب اللہ نے تمہارا بوجھ ہلکا کر دیا اور اسے معلوم ہے کقہ تققم میققں کمققزوری ہے۔‬
‫پس اگر تم میں سے سو آدمی صبر کرنے والے ہوں گے تو وہ دو سو پققر اور اگققر ہزار‬
‫ایسے ہوں گے تو وہ دو ہزار پر اللہ کے حکم سے غلبہ پا لیں گے۔ اور اللہ تو صققبر کرنققے‬
‫والوں کے ساتھ ہی ہے۔ )النفال ‪(8:66‬‬
‫سفیان نے عمرو بن دینار سے اور انہوں نے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت کی‬
‫ہے‪ ،‬انہوں نے فرمایا‪" :‬جب یہ آیت نازل ہوئی کہ 'اگر تم میں سے بیس بھی صبر کرنققے‬
‫والے ہوں گے تو وہ دو سو پر غالب آئیں گے۔' تو مسلمانوں پر یہ ذمہ داری عائد کر دی‬
‫گئی کہ دو سو کے مقابلے پر بیس آدمی مقابلے سے احتراز نہ کریں۔ اس کقے بعققد اللقہ‬
‫تعالی نے یہ آیت نازل کی کہ ' اچھا‪ ،‬اب اللہ نے تمہارا بوجھ ہلکا کر دیا اور اسے معلققوم‬
‫ہے کہ تم میں کمزوری ہے۔' اب یہ لزم ہو گیا کہ دو سو کے مقابلے پققر اگققر سققو آدمققی‬
‫ہوں تو وہ میدان جنگ سے پیچھے نہ ہٹیں۔ )بخاری‪ ،‬مسند شافعی(‬
‫جیسا کہ سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما نے ارشاد فرمایا‪ ،‬اللہ تعققالی ن قے خققود‬
‫ہی اس بات کی وضاحت فرما دی ہے اس لئے اب اس کی وضاحت کرنے کی ضرورت‬
‫نہیں ہے۔‬
‫نوٹ‪ :‬اللہ تعالی نے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو میدان جہاد میں اس وقت اترنے کا حکققم دیققا جققب‬
‫ان کی اور دشمن کی طاقت میں کم از کم ‪ 2:1‬کی نسبت موجود ہو۔ عجیب بققات ہہہے ک قہ موجققودہ‬
‫دور میں بہت سے جذباتی حضرات اس صورت میں بھی مسلمانوں کو جہاد کرنے کا مشورہ دیتے ہیں‬
‫جب ان کی اور دشمن کی طاقت میں شاید ‪ 1000000:1‬کا تناسب بھی نہیں ہوتا۔‬

‫بدکاری کی مرتکب عورتوں سے متعلق احکام میں تبدیلی‬


‫ایک اور مقام پر اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ْ‬
‫م‪ ،‬فَقإ ِ ْ‬
‫ن‬ ‫من ْك ُق ْ‬
‫ة ِ‬ ‫ن أ َْرب َعَق ً‬‫دوا عَل َي ْهِ ّ‬ ‫ست َ ْ‬
‫شه ِ ُ‬ ‫م َفا ْ‬ ‫سائ ِك ُ ْ‬ ‫ن نِ َ‬‫م ْ‬ ‫ة ِ‬ ‫ح َ‬
‫ش َ‬ ‫فا ِ‬ ‫ن ال ْ َ‬‫َوالّلِتي ي َأ َِتي َ‬
‫َ‬
‫ن‬‫ه ل َهُ ق ّ‬
‫ل الل ّق ُ‬ ‫جع َ ق َ‬
‫ت‪ ،‬أوْ ي َ ْ‬
‫َ‬
‫موْ ُ‬ ‫ن ال ْ َ‬‫حّتى ي َت َوَّفاهُ ّ‬ ‫ت َ‬ ‫ن ِفي ال ْب ُُيو ِ‬ ‫كو ْهُ ّ‬ ‫س ُ‬‫م ِ‬ ‫دوا فَأ ْ‬ ‫شه ِ ُ‬ ‫َ‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫ّ‬ ‫ً‬
‫ن‬ ‫ما‪ ،‬إ ِ ّ‬
‫ضوا عَن ْهُ َ‬ ‫حا فَأعْرِ ُ‬ ‫صل َ‬ ‫ن َتاَبا وَأ ْ‬ ‫ما‪ ،‬فَإ ِ ْ‬‫ذوهُ َ‬ ‫م َفآ ُ‬‫من ْك ْ‬ ‫ن ي َأت َِيان َِها ِ‬‫ذا ِ‬‫سِبيل۔ َوالل َ‬ ‫َ‬
‫ما۔‬‫حي ً‬ ‫واًبا َر ِ‬ ‫ن تَ ّ‬ ‫َ‬
‫ه كا َ‬ ‫ّ‬
‫الل َ‬
‫تم میں سے جو عورتیں بدکاری کی مرتکب ہوں ان پر اپنے میں سے چققار افققراد کققی‬

‫‪71‬‬
‫گواہی لو۔ اگر چار افراد گواہی دے دیں تو انہیں ان کے گ ھروں میقں قیققد کقر دو ی ہاں‬
‫تک کہ انہیں موت آ جائے یا اللہ تعالی ان کے لئے کققوئی اور راسققتہ نکققال دے۔ تققم میققں‬
‫سے جو جوڑا بھی اس فعل کا ارتکاب کرے‪ ،‬تو ان دونوں کو کچھ اذیت دو‪ ،‬پھر اگر وہ‬
‫توبہ کر لیں اور اپنی اصلح کر لیں تو انہیں چھوڑ دو۔ بے شک اللہ تو تققوبہ قبققول کرنقے‬
‫وال مہربان ہے۔ )النساء ‪(16-4:15‬‬

‫نوٹ‪ :‬اس معاملے میں بھی احکام کو تدریجا ً نافذ کیا گیا۔ پہلے بدکاری کرنے والوں کو کچھ اذیت دینے‬
‫اور پیشہ ور عورتوں کو ان کے گھروں میں نظر بند کرنے کا حکم دیا گیققا۔ اس کقے بعققد سققو کققوڑوں‬
‫کی سزا مقرر فرمائی گئی۔‬

‫اس کے بعد اللہ تعالی نے اپنی کتاب میں قید اور کچھ اذیت کی سزا کو منسوخ کر دیا‬
‫اور فرمایا‪:‬‬
‫جل ْد َةٍ ۔‬ ‫مائ َ َ‬
‫ة َ‬ ‫ما ِ‬
‫من ْهُ َ‬
‫حدٍ ِ‬ ‫دوا ك ُ ّ‬
‫ل َوا ِ‬ ‫ة َوالّزاِني َفا ْ‬
‫جل ِ ُ‬ ‫الّزان ِي َ ُ‬
‫زانی اور زانیہ دونوں میں سے ہر ایک کو سو کوڑے مارو۔ )النور ‪(24:2‬‬
‫سنت سے یہ بات واضح ہوئی کہ یہاں سو کوڑوں کی سزا کنوارے زانیوں کے لئے ہے۔‬
‫عبدالوہاب‪ ،‬یونس بن عبید سے‪ ،‬وہ حسن سے اور وہ عبادہ بقن صقامت رضقی اللقہ عنقہ‬
‫سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم ن قے فرمایققا‪" :‬مج قھ س قے‬
‫حاصل کرو‪ ،‬مجھ سے حاصل کرو‪ ،‬اللہ تعالی نقے ان )فاحشقہ عورتققوں( کقے لئے راسققتہ‬
‫نکال دیا۔ کنوارے بدکاروں کے لئے سو کوڑے اور ایک سال کی جلوطنی کی سققزا ہے‬
‫اور شادی شدہ بدکاروں کے لئے سو کوڑے اور رجم کی سزا ہے۔ )مسقلم‪ ،‬احمقد‪ ،‬ابقن‬
‫ماجہ‪ ،‬مسند شافعی(‬
‫اسی طرح ہمیں قابل اعتماد اہل علم سے اس کے مثل روایت ملی ہے۔ اسقے یققونس‬
‫بن عبید‪ ،‬حسن سے‪ ،‬وہ حطان الرقاشی سے‪ ،‬وہ عبادہ بن صامت رضققی اللقہ عنقہ سقے‬
‫اور وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کرتے ہیں۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت سے معلوم ہوتا ہے کہ سو کوڑے کی سزا‬
‫‪4‬‬
‫آزاد کنوارے بدکاروں کے لئے ہے اور شادی شدہ بدکاروں کے بارے میں یہ سزا منسققوخ‬
‫ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ رجم آزاد شادی شدہ بققدکاروں کقے لئے سقنت سقے ثققابت ہہہے۔‬
‫جب حضور کا یہ فرمان کہ "مجھ سے حاصل کرو‪ ،‬مجھ سے حاصل کرو‪ ،‬اللہ تعالی نے ان )فاحشہ‬
‫عورتوں( کے لئے راستہ نکال دیا۔ کنوارے بدکاروں کے لئے سو کوڑے اور ایک سال کی جلوطنققی کققی‬
‫سزا ہے اور شادی شدہ بدکاروں کے لئے سو کوڑے اور رجم کی سزا ہے۔" جققاری کیققا گیققا تققو اس‬
‫سے قید اور کچھ اذیت کی سزا بدکاروں کے لئے منسوخ کر دی گئی۔‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ماعز کو رجم کیا اور انہیں کوڑوں کقی سقزا نقہ دی‬
‫اور انیس )بن مالک السلمی( کو اپنی بیوی سے تفتیش کرنے کا حکم دیا کہ اگر وہ زنا‬
‫)بالرضا( کا اعتراف کر لیں تو انہیں بھی رجم کیا جائے۔ یہ واقعہ اس بات کی دلیل ہے‬
‫کہ آزاد شادی شدہ بدکاروں کے لئے سو کققوڑے کققی سققزا منسققوخ کققر دی گئی ہے اور‬
‫رجم کی سزا نافذ کر دی گئی ہے۔ چونکہ جو حکم آخر میں جاری کیا گیا ہوتا ہے و ہی‬
‫ہمیشہ کے لئے باقی رکھا جاتا ہے )اس لئے یہی حکم اب حتمی ہے(۔‬
‫نوٹ‪ :‬اس معاملے میں دور جدید میں ایک منفرد نقطہ نظر یہ پیش کیا گیا ہے کہ رسول اللہ صلی اللققہ‬

‫‪ 4‬ی ہاں غالبا ً نسخ کا لفظ "تخصیص" ک ے معنی میں استعمال ہوا ہے۔ اس کا مطلب ی ہ‬
‫ہے ک ہ ایک حکم کو کسی مخصصصوص صصصورت حصصال سص ے متعلصصق قصصرار دینصصا ۔ ورنص ہ امصصام‬
‫شافعی ن ے بڑی صراحت س ے اس باب ک ے شروع میں بیان کیا ہے ک ص ہ کتصصاب الل ص ہ ک ص ے‬
‫حکم کو سنت س ے منسوخ ن ہیں کیا جا سکتا ۔‬

‫‪72‬‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے بعض مقدمات میں رجم کی جو سزا سنائی‪ ،‬یہ دراصل زنا نہیں سققورہ مققائدہ میققں‬
‫بیان کردہ "فساد فی الرض" کے جرم میں تھی۔ اس وجہ سے سنت سے قرآن کا کوئی حکم منسوخ‬
‫نہیں ہوا بلکہ رجم‪ ،‬دراصل قرآن ہی کے ایک دوسرے حکم پر عمل تھا۔ اس نقطہ نظقر سقے ا ہل علقم‬
‫کے مختلف حلقوں نے سخت اختلف کیا ہے۔‬

‫اللہ تعالی کی کتاب اور پھر اس کے نبی صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم کققی سققنت س قے‬
‫ثابت ہوتا ہے کہ )چونکہ یہ حکم صرف آزاد مرد و عورت کے لئے ہے اس لئے( ایسققا غلم‬
‫جو بدکاری کا مرتکب ہو‪ ،‬اس سزا کے حکم میں داخل نہیں ہے۔ الل قہ تبققارک و تعققالی‬
‫لونڈیوں کے متعلق ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫ذا أ ُحصن‪ :‬فَإ َ‬
‫ن‬
‫مق ْ‬
‫ت ِ‬
‫صقَنا ِ‬
‫ح َ‬ ‫مققا عَل َققى ال ْ ُ‬
‫م ْ‬ ‫ف َ‬
‫صق ُ‬ ‫شقةٍ فَعَل َي ْهِق ّ‬
‫ن نِ ْ‬ ‫ح َ‬
‫فا ِ‬
‫ن بِ َ‬
‫ن أت َي ْ َ‬
‫ِ ْ‬ ‫فَإ ِ َ ْ ِ ّ‬
‫ب۔‬ ‫ال ْعَ َ‬
‫ذا ِ‬
‫پھر جب "احصان" سے محفوظ ہو جائیں‪ ،‬اور اس کے بعد کسی بدکاری کقی مرتکققب‬
‫ہوں تو ان پر اس سزا کا نصف ہے جو شادی شدہ خواتین کے لئے مقرر کققی گئی ہہہے۔‬
‫)النساء ‪(4:25‬‬
‫سزا کا نصف تو صرف کوڑوں ہی میں ہو سکتا ہے جس کو تقسیم کرنا ممکن ہے۔‬
‫رجم تو جان سے مار دینے کا نام ہے جس کا نصف ممکن ہی نہیں ہے۔ رجققم کیققا جققانے‬
‫وال شخص تو پہلے پتھر ہی سے مر سکتا ہے۔ ایسی صقورت میقں مزیقد پت ھر نقہ مقارے‬
‫جائیں گے۔ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ وہ ہزار پتھروں سے بھی نہ مرے اور مزیققد پت ھر مققارنے‬
‫پڑیں۔ اس سزا کا نصف کرنا تو ہمیشہ کے لئے ناممکن ہے۔ )رجم کی( سزا اس وقققت‬
‫تک دی جائے گی جب تک کہ اس کی جان نکل ن قہ جققائے۔ جققان نکققل جققانے کققا انحصققار‬
‫پتھروں کی تعداد اور سائز پر منحصر ہے۔ یہ بات تو سققب اچ ھی طققرح جققانتے ہیققں کقہ‬
‫رجم کا نصف کرنا ممکن ہی نہیں ہے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" :‬اگر تمہاری لونڈی بدکاری کی مرتکققب ہو‬
‫اور اس کا جرم ثابت ہو جائے تو اسے کوڑوں کی سزا دو۔" )بخاری‪ ،‬مسلم‪ ،‬احمد( آپ نے ی ہاں یقہ‬
‫نہیں فرمایا کہ اسے رجم کرو۔ اس کے معاملے میں مسلمانوں کا کوئی اختلف نہیں کہ‬
‫غلموں کو بدکاری کے جرم میں رجم نہیں کیا جائے گا۔‬
‫نوٹ‪ :‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میں غلمی عرب میققں موجققود ت ھی۔ اس زمققانے‬
‫میں موجود غلموں اور لونڈیوں کی اخلقی تربیت اس طرح سے نہیں کی جاتی تھی‪ ،‬جیسا کہ کوئی‬
‫اپنی اولد کی تربیت کرتا ہے۔ اس تربیت کی کمی کے باعث لونڈی غلموں کققا بققدکاری جیس قے جققرم‬
‫میں ملوث ہو جانے کا امکان آزاد شخص کی نسبت زیادہ تھا۔ ان کی اس کمزوری کی وجہ سققے اللققہ‬
‫تعالی نے یہ حکم دیا کہ ان کے جرم کی سزا ّآزاد شخص کی نسبت آدھی ہو گی۔ اس سقے یقہ معلققوم‬
‫ہوتا ہے کہ دین میں کس قدر حکمت ہے اور اس کے احکام کا نفاذ حالت کققی مناسققبت س قے ہہہی ہہہوا‬
‫کرتا ہے۔‬

‫ایک لونڈی کا "احصان" اس کا اسلم قبول کر لینا ہے۔ ہم ن قے ی ہاں جققو کچ قھ ک ہا وہ‬
‫سنت کے استدلل اور اکثر اہل علم کے اجماع سے کہا ہے۔ جیسا کقہ رسقول اللقہ صقلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کا ارشاد ہے کہ "اگر تمہاری لونڈی بدکاری کی مرتکققب ہو اور اس کققا جققرم‬
‫ثابت ہو جائے تو اسے کوڑوں کی سزا دو۔" یہاں آپ نے لونڈی کے شادی شدہ ہونے یا نققہ ہونے‬
‫کا کوئی ذکر نہیں فرمایا۔‬
‫اس وجہ سے لونڈیوں کے بارے میققں ہم اللقہ تعققالی کقے اس ارشققاد کقہ " پ ھر جققب وہ‬
‫"احصان" سے محفوظ ہو جائیں‪ ،‬اور اس کے بعد کسی بدکاری کی مرتکب ہوں تققو ان پققر اس سققزا‬
‫کا نصف ہے جو شادی شدہ خواتین کے لئے مقرر کی گئی ہے۔" کے بارے میں اخذ کر سکتے ہیققں‬

‫‪73‬‬
‫کہ "احصان" کا معنی یہ ہے کہ وہ اسلم لے آئیں۔ اس سے یہ معنی مراد لینا درست نہیں‬
‫کہ "وہ نکاح کر لیں اور ان سے ازدواجققی تعلققق قققائم ہو جققائے یققا جققب وہ آزاد کققر دی‬
‫جائیں اگرچہ ان سے ازدواجی تعلق قائم نہ کیا گیا ہو۔"‬
‫کوئی شخص یہ کہہ سکتا ہے کہ اس معققاملے میققں ہم لفققظ "احصققان" سقے مختلققف‬
‫معانی مراد لے رہے ہیں۔ یہ بات درست ہے‪ ،‬احصان کا مطلب یہ ہوتا ہے ک قہ جققو شققخص‬
‫"احصان" حاصل کر لے‪ ،‬اس کے اور حرام چیزوں کے درمیان رکاوٹیں قققائم ہو جققائیں‬
‫)اور وہ ان سے محفوظ ہو جائے(۔ اسلم لنے سے ایک شخص اور گنققاہوں ک قے درمیققان‬
‫رکاوٹ کھڑی ہو جاتی ہے۔ اسی طرح آزاد ہو جانے‪ ،‬شادی کر لین قے‪ ،‬ازدواجققی تعلقققات‬
‫قائم کر لینے‪ ،‬گھر میں قید کئے جانے‪ ،‬اور دیگر طریقوں سے ب ھی انسققان اور گنققاہوں‬
‫کے درمیان رکاوٹیں قائم ہو جاتی ہیں۔ مثال کے طور پر اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ْ‬
‫سك ُ ْ‬
‫م۔‬ ‫ن ب َأ ِ‬
‫م ْ‬ ‫صن َك ُ ْ‬
‫م ِ‬ ‫ح ِ‬ ‫س ل َك ُ ْ‬
‫م ل ِت ُ ْ‬ ‫صن ْعَ َ َ‬
‫ة لُبو ٍ‬ ‫وَعَل ّ ْ‬
‫مَناهُ َ‬
‫ہم نے انہیں )یعنی داؤد کو( تمہارے فائدے کے لئے زرہ بنانے کی صققنعت سققکھا دی تھ ہی‬
‫تاکہ تمہیں ایک دوسرے کی مار سے محفوظ رکھے۔ )النبیا ‪(21:80‬‬
‫صن َةٍ ۔‬
‫ح ّ‬ ‫ميًعا إ ِّل ِفي قًُرى ُ‬
‫م َ‬ ‫ج ِ‬ ‫قات ُِلون َك ُ ْ‬
‫م َ‬ ‫َل ي ُ َ‬
‫یہ تمہارا مقابلہ کبھی مل کر نہ کریں سوائے اس کے یہ قلعہ بند محفققوظ ش قہروں میققں‬
‫ہوں۔ )الحشر ‪(59:14‬‬
‫ان آیات میں "احصان" سے مراد محفوظ ہونا ہی ہے۔ اوپققر مققذکور زیققر بحققث آیققت )‬
‫‪ (4:25‬کا شروع اور آخر اس بات کی دلیل ہے کہ لفظ "احصان" کا معنی یہاں اسلم‬
‫ہی ہے۔ یہاں اس سے نکاح‪ ،‬آزادی‪ ،‬قید‪ ،‬یا عفت مراد لینا درسقت نہیقں اگرچقہ یقہ سقب‬
‫لفظ "احصان" کے معنی میں داخل ہیں۔‬

‫ناسخ و منسوخ آیات جن کا علم سنت اور اجماع س ے‬


‫ہوتا ہے‬
‫وارث کے حق میں وصیت جائز نہ ہونے کی مثال‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫ن‬ ‫ة ل ِل ْ َ‬
‫وال ِقد َي ْ ِ‬ ‫خي ْقًرا ال ْوَ ِ‬
‫ص قي ّ ُ‬ ‫ن ت َقَر َ‬
‫ك َ‬ ‫ت إِ ْ‬ ‫م ال ْ َ‬
‫م قوْ ُ‬ ‫ح قد َك ُ ْ‬
‫ض قَر أ َ‬‫ح َ‬ ‫م إِ َ‬
‫ذا َ‬ ‫ب عَل َي ْك ُق ْ‬
‫ك ُت ِق َ‬
‫َ‬
‫ن۔‬
‫قي َ‬
‫مت ّ ِ‬‫قا عََلى ال ْ ُ‬ ‫ح ّ‬
‫ف َ‬‫معُْرو ِ‬ ‫ن ِبال ْ َ‬‫َواْلقَْرِبي َ‬
‫تم پر لزم کیا جا رہا ہے کہ جب تم میں س قے کسققی کققو مققوت آئے اور وہ کچ قھ مققال و‬
‫دولت چھوڑ رہا ہو تو وہ والدین اور رشتہ داروں کے لئے معروف طریق قے س قے وصققیت‬
‫کرے۔ یہ حق ہے متقی لوگوں پر۔ )البقرۃ ‪(2:180‬‬
‫ص قي ّ ً َ‬ ‫وال ّذين يتوفّون منك ُم ويذ َرو َ‬
‫ل‬‫ح قوْ ِ‬‫مَتاعًققا إ ِل َققى ال ْ َ‬‫م َ‬
‫جهِ ق ْ‬
‫ة ِلْزَوا ِ‬ ‫جا وَ ِ‬
‫ن أْزَوا ً‬
‫َ ِ َ َُ َ ْ َ ِ ْ ْ ََ ُ َ‬
‫خرجن فََل جناح عَل َيك ُم فققي مققا فَعل ْقن فققي َ‬ ‫غَي َْر إ ِ ْ‬
‫ن‬ ‫ق‬ ‫م‬
‫ِ ِ ّ ِ ْ‬ ‫ن‬ ‫ه‬ ‫سق‬ ‫ُ‬ ‫ف‬ ‫أن‬ ‫َ َ ِ‬ ‫َ‬ ‫ْ ْ ِ‬ ‫ُ َ َ‬ ‫ن َ َ ْ َ‬ ‫خَراٍج‪ ،‬فَإ ِ ْ‬
‫م۔‬
‫كي ٌ‬
‫ح ِ‬‫زيٌز َ‬
‫ه عَ ِ‬‫ف‪َ ،‬والل ّ ُ‬
‫معُْرو ٍ‬ ‫َ‬
‫تم میں سے جو لوگ وفات پا جائیں اور پیچھے بیویاں چھوڑ رہے ہوں‪ ،‬انہیں چاہیے کہ وہ‬
‫اپنی بیویوں کے حق میں وصیت کر جائیں کہ ایک سال تک انہیں نان و نفققہ دیققا جققائے‬
‫اور انہیں گھر سے نہ نکال جائے۔ پھر اگر وہ خود چلی جائیں‪ ،‬تو اپنی ذات س قے متعلققق‬
‫معروف طریقے پر جو بھی کریں‪ ،‬تم پر اس کی ذمہ داری نہیں ہے۔ اللہ سب پر غالب‬
‫اقتدار رکھنے وال اور حکیم و دانا ہے۔ )البقرۃ ‪(2:240‬‬
‫اللہ تعالی نے یہ احکام والدین‪ ،‬قریبی رشققتے داروں‪ ،‬خاونققد اور بیققوی کققی میققراث کقے‬

‫‪74‬‬
‫متعلق نازل فرمائے۔ )اس کے بعد وراثت کے تفصیلی احکام سورۃ نساء کی آیققت ‪-11‬‬
‫‪ 12‬میں نازل ہوئے۔( ان دونوں آیات سے ایک تو یہ احتمال ہو سکتا ت ھا ک قہ وراثققت ک قے‬
‫دوسرے احکام کے ساتھ والدین‪ ،‬رشققتے داروں اور شققریک حیققات ک قے لئے وصققیت کققی‬
‫اجازت ہے۔ اس لئے وراثت کے احکام پر عمل کرنے کے ساتھ ساتھ وصیت پر بھی عمل‬
‫کیا جائے گا۔ دوسرا احتمال یہ ممکن تھا کہ وراثت کے احکام نقے وصققیت کقے حکققم کققو‬
‫منسوخ کر دیا ہے۔‬
‫چونکہ یہ دونوں احتمال ممکن ہیں اس لئے اہل علم پر یہ لزم تھا ک قہ وہ اس معققاملے‬
‫میں )ایک آپشن اختیار کرنے کے لئے( کتاب اللہ سے راہنمائی حاصل کریققں۔ اگققر انہیققں‬
‫کتاب اللہ سے اس معاملے میں کوئی نص نہ ملے تو وہ رسول اللقہ صقلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کی سنت کی جانب رجوع کریں۔ اگر انہیں ایسی کوئی راہنمائی مل جائے جس‬
‫کی نسبت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی طرف قبول کققر لققی گئی ہو تققو وہ‬
‫اہل علم اسے بھی اللہ تعالی کی طرف سے ہی قبول کر لیں کیونکہ اللہ تعققالی نققے آپ‬
‫کی اطاعت ہم پر لزم کی ہے۔‬
‫جنگوں کے واقعات کو محفوظ کرنے والے ماہرین‪ ،‬خواہ وہ قریش میقں سقے ہوں نقہ‬
‫ہوں‪ ،‬اس معاملے میں اتفاق رائے رکھتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالقہ وسققلم نقے فتققح‬
‫مکہ کے سال ارشاد فرمایا‪)" :‬قرآن میں بیان کردہ حصہ پانے والقے( وارث کقے حققق میققں وصققیت‬
‫قبول نہ کی جائے گی اور ایک انکار کرنے والے کے بدلے ایمان لنے والے کو قتل نققہ کیققا جققائے گققا۔" یہ‬
‫روایت ہم تک ان لوگوں کے توسط سے پہنچی ہے جنہوں نے اسے جنگققوں ک قے واقعققات‬
‫محفوظ کرنے والے ماہرین سے براہ راست حاصل کیا ہے۔‬
‫یہ بات عام لوگوں سے عام لوگوں کو )تواتر سے( نقققل ہوئی ہے اور یقہ ان روایقات‬
‫کی نسبت زیادہ مستند ہے جو ایک شخص سے ایک شخص کو )خبر واحد( منتقل ہوتی‬
‫ہیں۔ اس بات پر ہم نے اہل علم کو متفق الرائے پایا ہے۔‬
‫شام کے بعض اہل علم نے اس حدیث کی ایسی سند بیان کی ہے جسقے حقدیث کقے‬
‫علوم کے ماہرین قبول نہیں کرتے کیونکہ اس کی روایت کرنے وال قے بعققض لوگققوں ک قے‬
‫حالت نامعلوم ہیں جس کے باعث اس کی روایت کا سلسلہ نبی صققلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ‬
‫وسلم تک ٹوٹا ہوا )منقطع( ہے۔ ہم نے اس حدیث کو جنگی واقعات کے ماہرین اور عام‬
‫لوگوں کے اجماع کی وجہ سے قبول کیا ہے۔‬
‫سفیان نے سلیمان الحول سے‪ ،‬انہوں نے مجاہد سے روایت کی ک قہ رسققول الل قہ صققلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ارشاد فرمایا‪)" :‬قرآن میں بیان کردہ حصہ پانے والے( وارث کققے‬
‫حق میں وصیت قبول نہیں کی جائے گی۔" )ترمذی‪ ،‬نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ابن ماجہ(‬
‫جو نتیجہ ہم نے اخذ کیا وہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم سقے جنگققی واقعققات کقے عققام‬
‫ماہرین کے ذریعے نقل کردہ حدیث ")قرآن میں بیان کردہ حصہ پانے وال قے( وارث ک قے حققق میققں‬
‫وصیت قبول نہیں کققی جققائے گققی۔" کی بنیققاد پقر ہے۔ اس کقے علوہ اس موضققوع پقر ایقک‬
‫منقطع حدیث اور عام لوگوں کا اجماع بھی ہے۔ یہ حدیث والدین اور شریک حیات کققے‬
‫لئے وصیت کے اختیار کو منسوخ کرتی ہے۔ اکثر عام اہل علم کی یہ رائے ہے ک قہ قریققبی‬
‫رشتے داروں کے لئے وصیت کے لزمی ہونے کا حکم منسوخ ہوا ہے۔ اب یہ لوگ وراثققت‬
‫کے احکام کے مطابق حصہ پائیں گے۔ جہاں تک ان لوگوں کا تعلققق ہے جققو قققرآن میققں‬
‫بیان کردہ وارثوں میں شمار نہیں ہوتے تو ان کے لئے تو وصققیت پہلقے ب ھی فققرض نہیققں‬
‫تھ ی ۔‬
‫طاؤس )بن کیسان( اور اہل علم کے ایک قلیل گروہ کی رائے ی قہ ہے ک قہ والققدین ک قے‬

‫‪75‬‬
‫حق میں وصیت تو منسوخ ہو چکی ہے البتہ ایسے رشتے داروں کے حق میں وصیت ہو‬
‫سکتی ہے جو )قرآن میں بیان کردہ( وارثوں میں شمار نہیں ہوتے۔ اس وجہ سے رشققتے‬
‫داروں سے ہٹ کر کسی اور شخص کے لئے وصیت کرنا جائز نہیں ہے۔ اگر ہمارے پققاس‬
‫جنگی واقعات کے ماہرین کی روایت کردہ حدیث "وارث کے حق میں وصیت قبول نہیققں کققی‬
‫جائے گی۔" نہ ہوتی تو ہم پر لزم تھا کہ ہم طاؤس کے نقطہ نظر کے حق میں یا اس کققے‬
‫خلف کوئی دلیل تلش کرتے۔‬
‫ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی ایک اور حدیث ملتی ہے جس میں ایک‬
‫فوت ہونے والے شخص کی وراثت میں سوائے چھ غلموں کے اور کچھ ن قہ ت ھا۔ اس نقے‬
‫مرتے ہوئے انہیں آزاد کرنے کی وصیت کی تھی۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نقے انہیقں‬
‫تین حصوں میں تقسیم کیا۔ ان میں سے دو کو )قرعہ اندازی کر کقے( آزاد کققر دیققا اور‬
‫چققار کققو بدسققتور غلم رکھت قے ہوئے وراثققت میققں منتقققل کققر دیققا۔ ی قہ روایققت ہم تققک‬
‫عبدالوھاب‪ ،‬ایوب‪ ،‬ابو قلبہ‪ ،‬ابو مھلب اور عمران بن حصین رضی اللہ عن قہ ک قے ذریع قے‬
‫پہنچی ہے۔‬
‫اس حدیث سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم ن قے مققرض المققوت‬
‫میں کی گئی وصیت کو برقرار رکھا ہے۔ جس شققخص ن قے ان غلمققوں کققا آزاد کیققا‪ ،‬وہ‬
‫عرب تھا اور عرب لوگ غیر عرب غلم ہی رکھتے ہیں جن ک قے اور مالققک ک قے درمیققان‬
‫کوئی خونی رشتہ نہ ہو۔ اسی وجہ سے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس وصیت کی‬
‫اجازت دے دی۔ اس سے یہ بھی ثابت ہوا کہ )طاؤس کے نقطہ نظققر ک قے برعکققس( اگققر‬
‫رشتے داروں کے علوہ کسی اور کے حق میں وصیت جائز نہ ہوتی تققو ان غلمققوں کققو‬
‫بھی آزاد نہ کیا جاتا کیونکہ وہ اس شخص کے خونی رشتے دار نہ تھے۔‬
‫اس حدیث سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ‪:‬‬
‫• وصیت کی زیادہ سے زیادہ مقدار کل مال کا تہائی حصہ ہے۔‬
‫• تہائی حصے سے زیادہ جو وصیت کی جائے گی اسے مسترد کر دیا جائے گا۔‬
‫• جو غلم پہلے ہی آزاد ہونے کے لئے اپنی قیمت ادا کر رہا ہے اس کقے حقق میقں‬
‫بھی وصیت قبول نہ کی جائے گی۔‬
‫• غلموں کی تین حصوں میں تقسیم سے پتہ چلتا ہے کہ قرعہ اندازی کققے ذریعققے‬
‫فیصلہ کرنا درست ہے۔‬
‫والدین کے حق میں وصیت درست نہیں کیونکہ وہ قانون وراثققت کقے تحققت پہلقے ہی‬
‫حصہ پانے والوں میں سے ہیں۔ ایسے رشتے دار اور دوسرے لوگ جو قانون وراثققت ک قے‬
‫تحت حصہ پانے والے نہ ہوں‪ ،‬ان کے حق میں وصیت جائز ہے بلکہ میری رائے میں تققو ی قہ‬
‫ایک اچھا عمل ہے کہ انسان ایسے رشتے داروں کے لئے بھی وصیت کر جائے۔‬
‫قرآن میں اس کے علوہ اور بھی ناسخ و منسوخ ہیں جو کہ مختلف مقامات پر ہیں۔‬
‫انہیں ہم مناسب موقع پر اس کتاب میں احکام القرآن کے باب میققں بیققان کریققں گ قے۔‬
‫میں نے یہاں صرف چند مثالیں بیان کی ہیں جن کی بنیاد پر دیگر مثققالوں کققو سققمجھا‬
‫جا سکتا ہے۔ میں سمجھتا ہوں کہ یہ مثالیں کقافی ہیقں اس لئے دیگقر مثقالوں کقو بیقان‬
‫کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ غلطیوں سے بچنے اور صحیح بات کو پانے کے لئے میں اللققہ‬
‫تعالی کی مدد کا طلبگار ہوں۔‬
‫اللہ تعالی کے نازل کردہ احکام‪ ،‬خواہ وہ تفصیلی ہوں یا اجمالی‪ ،‬ان کے ساتھ رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کو بیان کرنے کا مقصد یہ تھا ک قہ الل قہ تعققالی ن قے‬

‫‪76‬‬
‫جو مقام اپنے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کققو اپنققی کتققاب‪ ،‬دیققن اور دیققن کقے مققاننے‬
‫والوں میں عطا کیا ہے‪ ،‬اس کی وضاحت ہو جائے۔ لوگ اچھی طرح جققانتے ہیققں ک قہ آپ‬
‫کی اتباع دراصل اللہ تعالی ہی کی اطققاعت ہے۔ آپ کققی سققنت ہمیشقہ کتققاب اللقہ کقے‬
‫مطابق ہی ہوتی ہے اور کبھی اس کے متضاد نہیں ہوتی۔‬
‫جو بھی اس کتاب کو سمجھتا ہے وہ جانتا ہے کہ اللہ تعالی کے احکامات کا بیان بعض‬
‫اوقات اہل علم کے لئے )زبان سے متعلق ان کے علم کی وجہ سے( واضققح ہوتققا ہے اور‬
‫بعض اوقات غیر واضح۔ جو شخص کم علم رکھتا ہے اس کے لئے اس کی وضاحت کے‬
‫درجوں میں مزید فرق ہوتا ہے۔‬

‫ایس ے فرائض جن ک ے لئ ے قرآن میں نص موجود ہے ک ے‬


‫ناسخ و منسوخ کی مثالیں‬
‫جھوٹا الزام لگانے کی سزا اور لعان کا عمل‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ن‬ ‫م ثَ َ‬
‫مققاِني َ‬ ‫دوهُ ْ‬ ‫داَء‪َ ،‬فا ْ‬
‫جل ِق ُ‬ ‫م ي َأ ُْتوا ب ِأ َْرب َعَقةِ ُ‬
‫ش قه َ َ‬ ‫م لَ ْ‬ ‫ت‪ ،‬ث ُ ّ‬‫صَنا ِ‬
‫ح َ‬‫م ْ‬‫ن ال ْ ُ‬
‫مو َ‬ ‫ن ي َْر ُ‬
‫ذي َ‬‫َوال ّ ِ‬
‫م ال ْ َ‬ ‫ُ‬
‫دا‪ ،‬وَأوْل َئ ِ َ‬ ‫َ‬
‫ن۔‬
‫قو َ‬ ‫س ُ‬‫فا ِ‬ ‫ك هُ ْ‬ ‫م َ‬
‫شَهاد َةً أب َ ً‬ ‫قب َُلوا ل َهُ ْ‬
‫ة‪ ،‬وََل ت َ ْ‬ ‫جل ْد َ ً‬
‫َ‬
‫جو لوگ پاک دامن خواتین پر تہمت لگائیں‪ ،‬پھر چققار گققواہ ن قہ لقے کققر آئیققں‪ ،‬انہیققں ‪80‬‬
‫کوڑے مارو‪ ،‬اور ان کی گواہی پھر کبھی قبول ن قہ کققرو۔ ایس قے ہی لققوگ فاسققق ہیققں۔‬
‫)النور ‪(24:4‬‬
‫یہاں "محصنات" سے مراد آزاد بققالغ خققواتین ہیققں۔ لفققظ "احصققان" ب ہت سقے مختلققف‬
‫معانی کا جامع ہے۔ مزید ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫داُء إ ِّل َأن ُ‬ ‫وال ّذين يرمو َ‬
‫م‬
‫حققدِهِ ْ‬ ‫شَهاد َةُ أ َ‬ ‫م‪ :‬فَ َ‬ ‫سه ُ ْ‬‫ف ُ‬ ‫شه َ َ‬‫م ُ‬ ‫ن ل َهُ ْ‬ ‫م وَل َ ْ‬
‫م ي َك ُ ْ‬ ‫جهُ ْ‬ ‫ن أْزَوا َ‬ ‫َ ِ َ َْ ُ َ‬
‫ن‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫أ َْرب َعُ َ‬
‫ة اللهِ عَلي ْهِ إ ِ ْ‬ ‫ن لعْن َ َ‬ ‫ةأ ّ‬ ‫س ُ‬‫م َ‬ ‫خا ِ‬‫َوال َ‬ ‫ن۔‬ ‫صققادِِقي َ‬ ‫ن ال ّ‬ ‫م ْ‬ ‫هل ِ‬ ‫ت ِباللهِ إ ِن ّ ُ‬ ‫دا ٍ‬ ‫شَها َ‬
‫ن‬ ‫م ْ‬‫ه لَ ِ‬‫ت ِبالل ّهِ إ ِن ّ ُ‬ ‫دا ٍ‬ ‫شَها َ‬ ‫شهَد َ أ َْرب َعَ َ‬ ‫ن تَ ْ‬ ‫َ‬
‫بأ ْ‬ ‫ذا َ‬ ‫ن۔ وَي َد َْرأ ُ عَن َْها ال ْعَ َ‬ ‫ن ال ْ َ‬
‫كاذِِبي َ‬ ‫م ْ‬‫ن ِ‬‫كا َ‬ ‫َ‬
‫خامس َ َ‬
‫ن۔‬
‫صادِِقي َ‬ ‫ن ال ّ‬ ‫م ْ‬ ‫ن ِ‬ ‫كا َ‬‫ن َ‬ ‫ب الل ّهِ عَل َي َْها إ ِ ْ‬ ‫ض َ‬‫ن غَ َ‬ ‫ةأ ّ‬ ‫ن۔ َوال ْ َ ِ َ‬ ‫ال ْ َ‬
‫كاذِِبي َ‬
‫جو لوگ اپنی بیویوں پر الزام لگائیں اور ان کے پاس خود اپنے سوا کوئی اور گققواہ نققہ‬
‫ہو تو ان میں سے ایک شخص کی گواہی یہ ہے کہ وہ چار بار اللہ کے نام کی قسققم کھہہا‬
‫کر یہ کہے کہ وہ )اپنے الزام میں( ضرور سچا ہے اور پانچویں بار یہ ک ہے کقہ اس پققر اللقہ‬
‫کی لعنت ہو اگر وہ جھوٹا ہو۔ اور عورت سے سزا اسی صورت میں ٹل سکتی ہے ک قہ‬
‫وہ چار بار اللہ کا نام لقے کققر قسققم ک ھائے کقہ اس پققر الققزام لگققانے وال جھوٹققا ہے اور‬
‫پانچویں مرتبہ یہ کہے کہ مجھ پر اللہ کا غضب ہو اگر یہ شخص )اپنقے الققزام میققں( سققچا‬
‫ہو۔ )النور ‪(9-24:6‬‬

‫نوٹ‪ :‬اسلم کا قانون بدکاری کا الزام لگانے کے بارے میں بہت حساس ہے کیققونکہ اس کققی بنیققاد پققر‬
‫کسی شخص یا خاتون کو پوری عمر کے لئے بدنام کیا جا سکتا ہے۔ احادیث میں ب ھی اسققی بققات کققا‬
‫حکم دیا گیا ہے کہ اگر کسی شخص کا یہ جرم پوشیدہ ہو‪ ،‬تو اسے اچھالنے کی کوشش نہ کی جائے اور‬
‫اسے تنہائی میں نصیحت کی جائے۔ اگر کوئی شخص کسی پر بدکاری کا الققزام لگاتققا ہے اور اس پققر‬
‫چار گواہ پیش نہیں کر پاتا تو اسے یہ الزام عائد کرنے کے جرم میں ‪ 80‬کققوڑوں کققی سققزا دی جققائے‬

‫‪77‬‬
‫گی۔ اس کا مقصد یہی ہے کہ لوگ کسی کی کردار کشی سے باز رہیں۔‬
‫اگر یہی معاملہ میاں بیوی کے درمیان ہو جائے اور میاں اپنی بیوی کو کسی کے ساتھ بدکاری کرتققا‬
‫دیکھ لے تو یہ انتہا درجے کی غیرت کا معاملہ ہے۔ اسلم غیرت کے نام پر قتققل کققی اجققازت نہیققں دیتققا۔‬
‫اس کے لئے لعان کا قانون قرآن میں بیان کر دیا گیا ہے۔ خاوند اس مقدمے کقو عقدالت میقں لئے اور‬
‫چار بار قسم کھا کر گواہی دے کہ اس نے اپنی بیوی بدکاری کرتے ہوئے دیکھا ہے۔ پانچویں بار اس ک قے‬
‫لئے یہ کہنا لزم ہے کہ "اگر میں جھوٹا ہوں تو مجھ پر خدا کی لعنت یعنی اس کی رحمت سے دوری۔"‬
‫اتنے شدید الفاظ میں گواہی اور قسم دلوانے کا مقصد یہی ہے کہ کققوئی اپنققی بیققوی پققر جھوٹققا الققزام‬
‫لگانے سے باز رہے۔ جج اس عمل کے دوران اس شخص کو خققدا کققا خققوف دلتققا ر ہے اور آخققرت کقے‬
‫عذاب سے ڈراتا رہے۔ بدکاری کا یہ الزام صریح اور صاف الفاظ میں ہونققا چققاہیے‪ ،‬اشققارے کنققایے میققں‬
‫نہیں۔ اگر شوہر قسم کھانے سے انکار کرے تو اسے جھوٹا الزام لگانے کے جرم میں اسی کوڑوں کققی‬
‫سزا دی جائے گی۔‬
‫ان چار قسموں کے جواب میں بیوی سے پوچھا جائے گا۔ اگر وہ اپنے جرم کا اقرار کر لے تققو اس قے‬
‫سزا دی جائے گی۔ اگر وہ جرم کا اقرار نہ کرے تو اس سے بھی چققار مرتب قہ قسققم لققی جققائے گققی اور‬
‫پانچویں مرتبہ انداز یہ ہو گا کہ "اگر الزام سچا ہے تو مجھ پر خدا کی لعنت یعنی اس کی رحمت سققے‬
‫دوری۔" اس عمل کے دوران جج خاتون کو بھی خدا کا خوف دلتا رہے۔ ان قسموں کا مقصد یہ ہے کہ‬
‫خاتون نے اگر واقعتا ً جرم کیا ہو گا تو وہ خوف خدا کے باعث سچ بول سکتی ہے۔ اگر خاتون نقے ب ھی‬
‫یہ جوابی قسمیں کھا لیں تو اب اس کا مطلب یہ ہے کہ دونوں میں سے ایقک جھوٹقا ہے لیکقن اس کقا‬
‫تعین کرنا عدالت کے لئے ممکن نہیں ر ہا۔ اس صققورت میققں دونققوں کقے درمیققان عققدالتی حکققم سقے‬
‫علیحدگی کر دی جائے گی کیونکہ ان کے درمیان اعتماد کا تعلق اس عمل کے باعث ختم ہو جائے گا۔‬
‫احادیث سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ اس طرح کے چند مقدمات رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے‬
‫پاس لئے گئے اور آپ نے علیحدگی کروانے کے بعد خاتون کو وہ حقوق نہیں دیے جن کی وہ عام طلق‬
‫کی صورت میں مستحق ہوتی ہے۔ اسی طرح آپ نے شوہر کے دیے ہوئے مال اور حق مہر کققو خققاتون‬
‫سے واپس مرد کو نہیں دلوایا۔ آپ نے ج ھوٹی قسققمیں ک ھانے والقے مققرد اور عققورت دونققوں کقے لئے‬
‫آخرت میں سخت سزا کو بیان فرمایا۔‬

‫یہاں اللہ تعالی نے الزام لگانے والے عام شققخص اور خاونققد کقے درمیققان فققرق کیققا ہے۔‬
‫الزام لگانے وال اگر خاوند کے علوہ کوئی شخص ہو اور وہ چار گواہ نہ ل سکے تو اسققے‬
‫فورا ً جھوٹا الزام لگانے کے جرم میقں سقزا دی جقائے گقی۔ خاونقد اگقر اپنقی بیقوی پقر‬
‫بدکاری کا الزام لگائے تو وہ "لعان" کے ذریعے اس حد سے بچ سققکتا ہے۔‪ 5‬اس س قے ی قہ‬
‫معلوم ہوتا ہے کہ جو شخص بھی پاک دامن خواتین پر تہمققت لگققائے اس قے کققوڑوں کققی‬
‫سزا دی جائے گی۔ یہ اس شخص کے لئے ہے جو بقالغ آزاد خقواتین پقر تہمقت لگقائے اور‬
‫اس کا خاتون سے ازدواجی تعلق بھی نہ ہو۔‬
‫اس میں وہ بات بیان کی گئی ہے جس کا میں نے ذکر کیا۔ قرآن عربی زبان میں ہے‬
‫اس سے بعض اوقات کوئی لفظ بظاہر عام ہوتا ہے لیکن اس س قے کققوئی خققاص گققروہ‬
‫مراد ہوتا ہے۔ اگرچہ ان دونوں میں سے ایک آیت نے دوسری کو منسققوخ کیققا ہے لیکققن‬
‫ان دونوں کا حکم اب بھی اپنے اپنے حالت میں باقی ہے۔ جیسققا ک قہ الل قہ تعققالی ن قے ان‬
‫آیات کے حکم میں فرق کیا‪ ،‬ہم بھی فرق کریں گے اور جہاں اس نے ان ک قے حکققم کققو‬
‫اکٹھا کیا‪ ،‬ہم بھی اکٹھا کریں گے۔‬
‫جب الزام لگانے وال خاوند "لعان" کے عمل سے گزرتا ہے تو وہ )کققوڑوں کققی( سققزا‬
‫‪ 5‬اس فرق کی وج ہ ی ہ ہے ک ہ کسی اور عورت ک ے بار ے میں انسان اتنصصا حسصصاس ن ہیصصں‬
‫ہوتا ک ہ اس ے بدکاری کرت ے دیک ھ کر و ہ لزما ً ہی عدالت کی طرف جائ ے۔ اپنی بیوی کصص ے‬
‫معامل ے میں ہر شخص ب ہت حساس ہوتا ہے اور اس کی غیصصرت بصصڑ ے اقصصدام کصصا تقاضصصا‬
‫کرتی ہے۔ لوگ اس بنیاد پر غص ے میں قتل ب ھی کر دیت ے ہیں ۔ اسی انت ہائی اقدام س ے‬
‫روکن ے ک ے لئ ے الل ہ تعالی ن ے لعان کا قانون جاری کیا ہے۔‬

‫‪78‬‬
‫سے بچ جاتا ہے جیسا کہ اجنبی شخص اگر چار گواہ لے آئے تو وہ بھی سزا سے بچ جاتققا‬
‫ہے۔ اگر خاوند لعان کے عمل سے گزرنے کو تیار نہ ہہہو اور اس کققی بیققوی آزاد اور بققالغ‬
‫عورت ہو تو اس خاوند کو بھی سزا دی جائے گی۔‬
‫عجلنی اور ان کی اہلیہ کے متعلق لعان کی آیات نازل ہوئیں۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ‬
‫وسلم نے ان کے مابین لعان کا عمل کروایا۔ لعان کا یہ واقعہ سھل بن سققعد السققاعدی‬
‫اور ابن عباس نے بیان کیا ہے لیکن ابن عمر اور دیگر صحابہ )رضی اللہ عنہم( جققو اس‬
‫موقعے پر موجود تھے‪ ،‬انہوں نے اس موقع پر نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کقے الفققاظ‬
‫کو نقل نہیں کیا۔ انہوں نے اس معاملے میں رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم سقے‬
‫ایسے احکامات بیان کئے ہیں جو قرآن کی کسی نص میں موجود نہیں ہیں۔‬
‫ان میں سے ایک حکم تو یہ ہے کہ لعان کے عمل کے بعد میققاں بیققوی میققں علیحققدگی‬
‫کروا دی جائے گی اور خاوند کو )ہونے والے( بچے کا باپ قرار نہیں دیا جائے گا ہاں اگققر‬
‫بچے میں باپ سے واضح مشابہت ہو تو اسے اسی کی اولد قرار دیا جققائے گققا۔ حضققور‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" :‬اب بچے کا معاملہ بالکل واضح ہو گیققا جققس کققا ذکققر اللقہ‬
‫تعالی نے قرآن میں نہیں کیا۔" ابن عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ لعان ک قے عمققل‬
‫کے دوران جب پانچویں مرتبہ قسم کھائی گئی تو آپ نے فرمایا‪" :‬اس قے روکققو کیققونکہ اس‬
‫سے )آخرت کی( سزا لزم ہو جائے گی۔" )بخاری‪ ،‬ترمققذی‪ ،‬نسققائی‪ ،‬ابققوداؤد( )یعنققی آخققرت‬
‫کی سزا پانے سے بہتر ہے کہ انسان دنیا میں سزا پا لے۔(‬
‫اس سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ راویوں نے حدیث کے بعض حصے بیان نہیں کئے جو‬
‫کہ ضروری تھے۔ مثل ً انہوں نے یہ بیان نہیں کیا کہ حضور صلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم ن قے‬
‫لعان کا عمل میاں بیوی کے مابین کس طرح سے کروایا۔ انہوں نے یہ خیال کیا ہو گا کہ‬
‫جو شخص اللہ کی کتاب کا علم رکھتا ہے وہ جانتا ہی ہو گا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیققہ‬
‫و ٰالہ وسلم کتاب اللہ میں دیے گئے طریقے کے مطابق ہی لعان کروائیں گے۔ ان راویققوں‬
‫نے اسی پر اکتفا کیا کہ اللہ تعالی نے لعققان میققں قسققموں کققی تعققداد اور ہر ایققک کققی‬
‫گواہی کو بیان کیا ہے۔ انہوں نے میاں بیوی کے مابین لعان کے عمققل کقے دوران رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے الفاظ کو روایت نہیں کیا۔‬
‫لعان کے عمل اور قسموں کی تعداد کے بققارے میققں کتققاب اللقہ میققں کققافی تفصققیل‬
‫موجود ہے۔ جیسا کہ میں نے عرض کیا کہ بعض لوگوں نے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم‬
‫سے یہ بھی روایت کی ہے کہ آپ نے لعان کے عمل کے بعد میاں بیوی میں تفریقق کقروا‬
‫دی ہے۔ ہم نے اس معاملے میں کتاب اللہ کے ساتھ ساتھ اس سے پہلے بھی رسققول اللققہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی احادیث کو بیان کر دیا ہے۔‬
‫روزے کی مثال‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫ن قَب ْل ِك ُق ْ‬
‫م‬ ‫مق ْ‬
‫ن ِ‬ ‫ب عَل َققى ال ّق ِ‬
‫ذي َ‬ ‫مققا ك ُت ِق َ‬
‫م كَ َ‬
‫صقَيا ُ‬ ‫ب عَل َي ْك ُ ْ‬
‫م ال ّ‬ ‫مُنوا ک ُت ِ َ‬ ‫نآ َ‬‫ذي َ‬‫يَاأي َّها ال ّ ِ‬
‫َ‬
‫ت۔‬
‫دا ٍ‬ ‫دو َ‬ ‫مع ْ ُ‬‫ما َ‬ ‫ن۔ أّيا ً‬‫قو َ‬ ‫ل َعَل ّك ُ ْ‬
‫م ت َت ّ ُ‬
‫تم پر روزے فرض کئے گئے ہیں جیسا کہ تم سے پہلی امتوں پر فرض کئے گئے تھے تاکہ‬
‫تم متقی بن سکو۔ چند مقرر دنوں کے یہ روزے ہیں۔ )البقرۃ ‪( 184-2:183‬‬
‫ريضا ً‬
‫م ِ‬
‫ن َ‬ ‫ن َ‬
‫كا َ‬ ‫م ْ‬
‫ه وَ َ‬
‫م ُ‬ ‫شهَْر فَل ْي َ ُ‬
‫ص ْ‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫م ال ّ‬ ‫ن َ‬
‫شهِد َ ِ‬ ‫فَ َ‬
‫م ْ‬
‫اب سے جو شخص اس مہینے کو پائے وہ اس میں پورے مہینے کے روزے رکھے اور اگققر‬
‫کوئی مریض ہو )تو وہ دوسرے دنوں میں پورے کر لے۔(‬

‫‪79‬‬
‫اس کے بعد اللہ تعالی نے یہ واضح فرما دیا ہے کہ روزے کس مہینے میں فرض ہیں‪:‬‬
‫دى‬ ‫ن ال ُْهق َ‬ ‫مق ْ‬
‫ت ِ‬ ‫س وَب َي َّنقا ٍ‬ ‫ِ‬ ‫دى ِللّنقا‬ ‫هق ً‬ ‫ن ُ‬ ‫ققْرآ ُ‬ ‫ل ِفيقهِ ال ْ ُ‬ ‫ذي ُأنقزِ َ‬ ‫ن اّلق ِ‬ ‫ضقا َ‬ ‫م َ‬ ‫شهُْر َر َ‬ ‫َ‬
‫َ‬
‫ر‬
‫ف ٍ‬‫سقق َ‬ ‫ريضا ً أوْ عََلى َ‬ ‫م ِ‬‫ن َ‬ ‫كا َ‬ ‫ن َ‬ ‫م ْ‬ ‫ه وَ َ‬ ‫م ُ‬‫ص ْ‬ ‫شهَْر فَل ْي َ ُ‬ ‫م ال ّ‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫شهِد َ ِ‬ ‫ن َ‬ ‫م ْ‬‫ن فَ َ‬ ‫فْرَقا ِ‬ ‫َوال ْ ُ‬
‫مل ُققوا‬ ‫ُ‬ ‫َ‬
‫سقَر‪ ،‬وَل ِت ُك ْ ِ‬ ‫م ال ْعُ ْ‬ ‫ريقد ُ ب ِك ُق ْ‬ ‫سقَر وََل ي ُ ِ‬ ‫م ال ْي ُ ْ‬ ‫ريد ُ الل ّ ُ‬
‫ه ب ِك ُ ْ‬ ‫خَر‪ ،‬ي ُ ِ‬ ‫ن أّيام ٍ أ َ‬ ‫م ْ‬ ‫فَعِد ّةٌ ِ‬
‫ن۔‬‫شك ُُرو َ‬ ‫م تَ ْ‬ ‫م‪ ،‬وَل َعَل ّك ُ ْ‬ ‫داك ُ ْ‬ ‫ما هَ َ‬ ‫ه عََلى َ‬ ‫ة‪ ،‬وَل ِت ُك َب ُّروا الل ّ َ‬ ‫ال ْعِد ّ َ‬
‫رمضان وہ مہینہ ہے جس میں قرآن نازل ہوا۔ جو انسانوں کقے لئے سراسققر ہدایت ہے‬
‫اور ایسی واضح تعلیمات پر مشتمل ہے جو راہ راست دکھانے والققی اور حققق و باطققل‬
‫کا فرق کھول دینے والی ہیں۔ اس لئے اب سے جو شخص اس مہین قے کققو پققائے وہ اس‬
‫میں پورے مہینے کے روزے رکھے اور اگر کوئی مریض یا مسافر ہو تو وہ دوسرے دنققوں‬
‫میں گنتی پوری کر لے۔ اللہ تمہارے لئے آسققانی چاہتققا ہے اور مشققکل نہیققں چاہتققا۔ اس‬
‫گنتی کو پورا کر لو اور اللہ کی بڑائی بیان کرو کیونکہ اس نے تمہیں ہدایت دی تققا ک قہ‬
‫تم اس کے شکر گزار بنو۔ )البقرہ ‪(2:185‬‬
‫میں حدیث کے کسی ایسے عالم کو نہیں جانتا جس نے ہم سے پہلے محض یہ بیان کرنے‬
‫کے لئے کوئی حدیث روایت کی ہو کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے یہ وضاحت کیا ہو‬
‫کہ فرض روزے رکھنے کے لئے طے کردہ مہینہ رمضان ہے جققو ک قہ شققعبان اور شققوال ک قے‬
‫درمیان آتا ہے تا کہ انہیں اس مہینے کا علم ہو جائے۔ لوگوں کے لئے یہی کافی تھا کہ اللققہ‬
‫تعالی نے ان پر روزے فرض کئے ہیں۔‬
‫انہوں نے ایسے معاملت میں حدیث روایت کرنے کا اہتمام کیا ہے کہ رسول اللہ صلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سققفر میققں روزہ کیس قے رک ھا اور کیس قے ک ھول؟ اس کققی قضققا‬
‫کیسے ادا فرمائی؟ یہ اہتمام اس کے مماثل اور معاملت میققں ہے جققن کقے بققارے میققں‬
‫کتاب اللہ میں نص موجود نہیں ہے۔‬
‫میں کسی ایسے غیر عالم کو بھی نہیں جانتا جسے رمضان کے بارے میققں ی قہ سققوال‬
‫کرنے کی ضرورت پیش آئے کہ "یہ کون سققا مہینقہ ہے؟" یققا "کیققا اس میققں روزے رکھنققا‬
‫ضروری ہیں یا نہیں؟"۔ یہی معاملہ ان تمام فرائض کے بارے میں ہے جو الل قہ تعققالی ن قے‬
‫ہم پر لزم کئے ہیں جیسے نماز‪ ،‬زکوۃ‪ ،‬صاحب استطاعت کے لئے حج‪ ،‬زنا اور قتققل کقی‬
‫حرمت اور اس سے ملتے جلتے دوسرے احکام )کہ ان کی فرضققیت‪ ،‬اوقققات وغیققرہ کقے‬
‫بارے میں کسی کے ذہن میں سوال پیدا نہیں ہوتا کیونکہ یقہ احکقام ققرآن و سقنت سقے‬
‫بالکل واضح ہیں۔(‬
‫ہمارے پاس بہت سے معاملت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم کققی سققنت‬
‫موجود ہے جس معاملے میں قرآن میں کقوئی نقص نہیقں۔ حضقور صقلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم نے اللہ تعالی کی جانب سے اس کے معنی بیققان کئے ہیققں۔ مسققلمانوں )کقے ا ہل‬
‫علم( نے بہت سے فروعی مسائل میں مسائل بتقائے ہیقں جقن کقے متعلقق رسقول اللقہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے کوئی حدیث بھی منقول نہیں ہے۔‬
‫تین طلقوں کی مثال‬
‫ان میں اللہ تعالی کا یہ ارشاد بھی ہے‪:‬‬
‫ح‬ ‫قَها فََل ُ‬
‫جَنا َ‬ ‫ن ط َل ّ َ‬ ‫جا غَي َْر ُ‬
‫ه‪ ،‬فَإ ِ ْ‬ ‫ح َزوْ ً‬
‫حّتى َتنك ِ َ‬
‫ن ب َعْد ُ َ‬
‫م ْ‬ ‫ل لَ ُ‬
‫ه ِ‬ ‫ح ّ‬ ‫قَها فََل ت َ ِ‬ ‫ن ط َل ّ َ‬ ‫فَإ ِ ْ‬
‫َ‬
‫جَعا۔‬ ‫ن ي َت ََرا َ‬
‫ما أ ْ‬ ‫عَل َي ْهِ َ‬
‫اگر شوہر نے بیوی کو )تیسری مرتبہ( طلق دے دی تو اس کے لئے یہ جققائز نہیققں ک قہ وہ‬
‫اس سے دوبارہ شادی کرے سوائے اس کے وہ کسی اور شخص سے شادی کققرے۔ پ ھر‬
‫اگر وہ شخص بھی اسے طلق دے دے تو ان دونوں )یعنی پہلے خاوند اور بیوی( کے لئے‬

‫‪80‬‬
‫کوئی حرج نہیں کہ وہ دوبارہ آپس میں نکاح کر لیں۔ )البقرۃ ‪(2:230‬‬

‫نوٹ‪ :‬عربوں کے ہاں رواج تھا کہ ایک شخص اگر اپنی بیوی کو طلق دے دیتا تققو وہ اسقے محققض تنققگ‬
‫کرنے کے لئے اس سے رجوع کرتا اور پھر طلق دے دیتققا۔ اس طققرح وہ بیققوی پققر ظلققم کرنقے کقے لئے‬
‫جتنی چاہے طلقیں دیتا رہتا۔ قرآن نے اس سے منع کرنے کے لئے یہ قانون بنا دیا ک قہ رجققوع کرن قے کققی‬
‫اجازت صرف دو مرتبہ ہے۔ جو شخص تیسری مرتبہ ایسا کرے گا‪ ،‬اسے رجوع کا اختیار نہ ہو گا۔‬
‫ایک ہی وقت میں تین طلقیں یک بارگی دینے کو نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن قے سققخت ناپسققند‬
‫فرمایا اور اسے ایک ہی طلق قرار دیا۔ سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ کے دور میں یہی قانون رہا۔ سیدنا‬
‫عمر رضی اللہ عنہ کے زمانے میں لوگوں نے کثرت سے طلق دینا شروع کر دی جس سے روکنقے کقے‬
‫لئے انہوں نے ایسے حالت میں تین طلقیں نافذ کرنا شروع کققر دیققں تققاکہ لققوگ طلق دینقے سقے بققاز‬
‫رہیں۔ آپ نے ایسے شخص کو کوڑوں کی سزا بھی دی جس نے ایققک ہی مرتب قہ تیققن طلقیققں دے دی‬
‫ہوں۔‬

‫اللہ تعالی کے اس ارشاد کہ "سوائے اس کے وہ کسی اور شخص س قے شققادی کققر ل قے"‬
‫میں ایک احتمال تو یہ تھا کہ "وہ کسی اور خاوند س قے )صققرف( نکققاح ہی کققر لقے"۔ یقہ‬
‫معنی ان لوگوں نے قبول کیا جو قرآن کے اولین مخاطب تھے۔ جب نکاح کا معا ہدہ ہو‬
‫گیا )یعنی ایجاب و قبول( ہو گیا تو اسے شادی قرار دیا جائے گا۔ اس حکم میں دوسرا‬
‫احتمال یہ ہو سکتا تھا کہ "وہ کسی دوسرے خاوند سے ازدواجی تعلقات قائم کققر لققے۔"‬
‫اس کی وجہ یہ ہے کہ لفققظ "نکققاح" سقے شققادی کقا معا ہدہ کرنقا اور ازدواجقی تعلققات‬
‫دونوں مراد لئے جا سکتے ہیں۔‬
‫ایک ایسی خاتون جن کے خاوند نے انہیں تین مرتبہ طلق دے دی ت ھی اور ان ہوں ن قے‬
‫بعد میں ایک اور شخص سے نکاح کر لیا تھا‪ ،‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم ن قے‬
‫فرمایا‪" :‬تم اس وقت تک پہلے خاوند کے لئے حلل نہ ہوگی جب تک کہ دوسرا خاوند تم‬
‫سے اور تم اس سے لطف اندوز نہ ہو لو۔" یعنی تم اس دوسرے خاونققد س قے ازدواجققی‬
‫تعلقات قائم نہ کر لو۔ نکاح کا مطلب ازدواجی تعلقات قائم کرنا ہی ہوتا ہے۔‬
‫کوئی شخص یہ سوال کر سکتا ہے کہ کیا اس بات کے لئے آپ کقے پققاس رسققول اللقہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی کوئی حدیث ہے؟ اس کے جواب میں ہم یہ حدیث پیش کر‬
‫سکتے ہیں‪:‬‬
‫سفیان نے ابن شہاب سے‪ ،‬انہوں نے عروۃ سے اور انہوں نے سیدہ عائشہ رضی اللہ عن ہا‬
‫سے روایت کی ہے‪ :‬رفاعہ کی بیوی نبی صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققی خققدمت میققں‬
‫حاضر ہوئیں اور کہنے لگیں‪" ،‬رفاعہ نے مجھے طلق دی اور میققری وہ طلق مکمققل ہو‬
‫گئی )یعنی تین پوری ہو گئیں(۔ اس کے بعد میققری شققادی عبققدالرح ٰمن بققن زبیققر سقے‬
‫ہوئی ہے اور وہ ازدواجی تعلقات قائم کرنے سے قاصر ہیں۔" رسول اللہ صلی اللہ علیققہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪ " ،‬کیا تم رفاعہ کی طرف واپس جانے کا ارادہ رک ھتی ہو؟ ایسققا‬
‫اس وقت تک نہیں ہو سکتا جب تک تم دونوں ایک دوسرے سے لطف اندوز نہ ہو لققو۔"‬
‫)بخاری‪ ،‬مسلم‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ترمذی‪ ،‬ابن ماجہ(‬
‫اس طریقے سے رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسقلم نقے وضقاحت فرمقا دی کقہ ایقک‬
‫خاتون جسے اس کے پہلے خاوند نے تین مرتبہ طلق دے دی ہو‪ ،‬اسققی وقققت اپن قے پہل قے‬
‫خاوند کے لئے حلل ہو سکتی ہیں جب وہ کسی اور شخص سے نکققاح کققر لیققں اور اس‬
‫نکاح میں دوسرے خاوند کے ساتھ ازدواجی تعلقات بھی قائم ہو جائیں۔‬
‫نوٹ‪ :‬احادیث میں واضح طور پر حللہ کرنے اور کروانے کققو گنققاہ قققرار دیققا گیققا ہے اور اس کققام کققی‬
‫مذمت کی گئی ہے۔ حللہ سے مراد یہ ہے کہ کوئی شخص طلق دینے کا ارادہ رکھ کر کسی خاتون سے‬
‫نکاح کرے۔‬

‫‪81‬‬
‫بعض اہل علم نے اس معاملے میں امام شافعی سے اختلف کیا ہے۔ ان کے نزدیک محض نکققاح ہو‬
‫جانے ہی سے وہ خاتون پہلے مرد کے لئے حلل ہو جاتی ہے۔ جہاں تک اوپر بیان کردہ حدیث کا تعلق ہے‬
‫تو ان کے نزدیک اس حدیث کے دوسرے طرق سے یہ معلوم ہوتا ہے کقہ اس خققاتون نقے اپنقے دوسققرے‬
‫خاوند پر نامردی کا غلط الزام لگایا تھا جس کی سزا کے طققور پققر رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم نے ان سے یہ سخت بات ارشاد فرمائی۔‬

‫ایس ے قرآنی احکام جن ک ے سات ھ رسول الل ہ کی سنت‬


‫ب ھی موجود ہے‬
‫وضو میں اعضا کو ایک بار یا تین بار دھونے کی مثال‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬
‫حوا‬
‫سقق ُ‬
‫م َ‬
‫ق‪َ ،‬وا ْ‬ ‫إ َِلى ال ْ َ‬
‫مَراِفقق ِ‬ ‫م وَأي ْدِي َك ُ ْ‬
‫م‬ ‫جوهَك ُ ْ‬ ‫سُلوا وُ ُ‬ ‫صَلةِ َفاغْ ِ‬‫م إ َِلى ال ّ‬ ‫ذا قُ ْ‬
‫مت ُ ْ‬ ‫إِ َ‬
‫َفاط ّهُّروا ۔‬ ‫ْ‬ ‫جل َك ُ ْ َ‬ ‫َ‬
‫جن ًُبا‬
‫م ُ‬ ‫ن ك ُن ْت ُ ْ‬ ‫ن‪ ،‬وَإ ِ ْ‬‫م إ ِلى الك َعْب َي ْ ِ‬ ‫سك ُ ْ‬
‫م وَأْر ُ‬ ‫ب ُِرُءو ِ‬
‫جب تم نماز کے لئے اٹھو تو اپنے چہرے دھو لو اور ہاتھوں کو کہنیوں تققک د ھو لیققا کققرو‬
‫اور اپنے سروں کا مسح کرو اور پاؤں کو ٹخنوں تک دھو لو۔ اگر تم حالت جنابت میں‬
‫ہو تو پاک ہو جایا کرو۔ )المائدہ ‪(5:6‬‬
‫سُلوا۔‬
‫حّتى ت َغْت َ ِ‬
‫ل َ‬
‫سِبي ٍ‬
‫ري َ‬ ‫جن ًُبا إ ِّل َ‬
‫عاب ِ ِ‬ ‫وََل ُ‬
‫اور نہ ہی جنابت وال شخص )نماز کے قریب جائے( یہاں تک ک قہ غسققل کققر ل قے سققوائے‬
‫اس کے کہ وہ مسجد سے بطور راستہ گزرنے وال ہو۔ )النساء ‪(4:43‬‬
‫اس سے یہ بات واضح ہو گئی کہ حالت جنابت میں وضو کی بجائے غسل سے پققاکیزگی‬
‫حاصل کرنا ضروری ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے یہ سققنت قققائم کققی ک قہ‬
‫آپ نے اسی طرح وضو فرمایا جیسا کہ اللہ تعالی نے حکم دیا تھا۔ آپ ن قے چ ہرہ دھویققا‪،‬‬
‫ہاتھوں کو کہنیوں تک دھویا‪ ،‬سر کا مسح فرمایا اور پاؤں کو ٹخنوں تک دھویا۔‬
‫عبدالعزیز بن محمد نے زید بن اسلم سے‪ ،‬انہوں نے عطاء بن یسار سے اور ان ہوں ن قے‬
‫ابن عباس رضی اللہ عنہما سے اور انہوں نے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے روایققت‬
‫کی کہ آپ نے وضو میں ہر عضو کو ایک ایک بار دھویا۔ )ترمذی‪ ،‬نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ابن‬
‫ماجہ‪ ،‬احمد(‬
‫مالک نے عمرو بن یحیی سے‪ ،‬انہوں نے اپنے والد سے‪ ،‬انہوں نے عبداللہ بن زید سے جو‬
‫عمرو بن یحیی کے دادا تھے‪ ،‬پوچھا‪" :‬کیا آپ مجھے کر کے دکھا سکتے ہیققں ک قہ رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کیسے وضو کیا کرتے تھے؟" عبداللہ بولے‪" ،‬بالکل!" ان ہوں‬
‫نے پانی منگوایا اور اسے اپنے ہاتھوں پر ڈال کر ہاتھوں کو دو مرتبہ دھویا۔ پھر انہوں نے‬
‫تین مرتبہ کلی کی اور تین مرتبہ ناک میں پانی ڈال۔ اس کے بعد انہوں نے تین مرتبہ منہ‬
‫دھویا‪ ،‬پھر دو دو مرتبہ انہوں نے اپنی ہاتھوں کو کہنیوں تک دھویا۔ اس کے بعد انہوں نے‬
‫سر کا مسح اپنے ہاتھ سے اس طرح سے کیا کہ ہاتھ کو پہلے پیچھے لے گئے اور پھر آگ قے‬
‫لئے۔ انہوں نے مسح کا آغاز سر کے اگلے حصے سے کیا‪ ،‬پھر ہاتھ کو گردن کققی طققرف‬
‫لے گئے اور اس کے بعد اسے واپس وہیں لئے جہاں سے انہوں نے مسح کا آغاز کیا تھا۔‬
‫اس کے بعد انہوں نے پاؤں دھوئے۔ )نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ابن ماجہ‪ ،‬مالک‪ ،‬احمد(‬
‫اللہ تعالی کے اس ارشاد کہ "اپنے منہ دھوؤ" کا ظاہری مطلب یہ ہے کہ کم از کم منہ کققو‬
‫ایک بار دھوؤ۔ اس میں یہ احتمال پیدا ہوا کہ کیا منہ کو ایک سے زیادہ مرتبقہ ب ھی دھویققا‬
‫جا سکتا ہے؟ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے کی سنت سے معلققوم ہوتققا ہے کقہ‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے وضو میں ایک ایک بار اعضا کو دھویا جو کققہ قققرآن‬

‫‪82‬‬
‫کے ظاہری معنی کے قریب ترین ہے۔ یہ کم از کم ہے جققس پققر "د ھونے" کققا اطلق ہو‬
‫سکتا ہے۔ اس کے علوہ آپ نے دو اور تین مرتبہ بھی دھویا جو کہ آپ کی سنت ہے۔‬
‫چونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کم از کم ایک بار دھونا ہے اس‬
‫لئے ہم یہ نتیجہ اخذ کر سکتے ہیں کہ ایک سے کم مرتبقہ دھونقا جقائز نہیقں ہے۔ اس سقے‬
‫وضو اور نماز ہوتے ہی نہیں۔ ایک سے زیادہ مرتبہ دھونے میں اختیار ہے۔یہ وضو میں لزم‬
‫نہیں ہے۔ ایک سے کم مرتبہ دھونا وضو میں جائز نہیں ہے۔‬
‫یہ ان فرائض کی طرح ہے جو میں اس سے پہلے بیان کر چکققا ہوں۔ اگققر ہم تققک یقہ‬
‫احادیث نہ پہنچی ہوتیں تو کتاب اللہ کا بیان کافی تھا۔ اب جب ہم تققک احققادیث پہنچققی‬
‫ہیں تو یہ کتاب اللہ کی پیروی ہی میں ہیں۔‬
‫جن اہل علم نے یہ احادیث روایت کی ہیں انہوں نے شاید ایسا اس لئے کیقا ہے کقہ یقہ‬
‫معلوم ہو جائے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اکققثر اوقققات اعضققا کققو وضققو‬
‫میں تین مرتبہ دھویا۔ اس سے وہ یہ بتانا چاہتے تھے کہ تین مرتبہ دھونا ایک اختیاری عمل‬
‫ہے۔ ایسا نہیں ہے کہ تین مرتبہ دھونا ضروری ہو اور اس میں کمی کرنا جائز نہ ہ ہو۔ یہ ہی‬
‫بات حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے مققروی اس روایققت میققں ب ھی ملققتی ہے ک قہ‪:‬‬
‫"جس نے اس طریقے سے وضو کیا )یعنی تین تین بار دھو کر( پھر دو رکعققتیں پڑھیققں‪،‬‬
‫تو اس نے جو کچھ بھی )صغیرہ گناہ( کئے‪ ،‬وہ معققاف ہو جققاتے ہیققں۔" )بخققاری‪ ،‬مسققلم‪،‬‬
‫نسائی‪ ،‬ابوداؤد( ان اہل علم کا مقصد یہ تھا کہ وضو میں اس اضافے میں فضققیلت ہے‬
‫جو کہ ایک نفلی امر ہے۔‬
‫وضو میں کہنیوں اور ٹخنوں کو دھونے کی مثال‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے وضو میققں دونققوں کہنیققوں اور ٹخنققوں کققو ب ھی‬
‫دھویا ہے۔ آیت میں یہ احتمال موجققود ت ھا ک قہ ہاتھوں اور پققاؤں کققو کہنیققوں اور ٹخنققوں‬
‫"سمیت" دھویا جائے یا کہنیوں اور ٹخنوں "تک" دھویا جائے اور کہنیققوں اور ٹخنققوں کققو‬
‫دھونے میں شامل نہ کیا جائے۔ اہل علم نے اس کی وضاحت کے لئے حقدیث روایققت کقر‬
‫دی ہے۔ آیت کے ظاہری مفہوم سے بھی یہی واضح ہوتا ہے کہ کہنیوں اور ٹخنوں کو بھی‬
‫دھویا جائے۔ یہ قققرآن کققی وضققاحت کقے سققاتھ سققاتھ سققنت کققی وضققاحت ب ھی ہے۔ یقہ‬
‫تفصیلت اس مثال اور پہلے دی گئی مثالوں میں اہل علم کے لئے واضح ہیں البتققہ غیققر‬
‫اہل علم کے لئے اس کی وضاحت میں فرق ہو سکتا ہے۔‬
‫غسل کے طریقے کی مثال‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غسل جنابت کی جو سققنت قققائم کققی اس ک قے‬
‫مطابق پہلے شرمگاہ کو دھویا جائے‪ ،‬پھر نماز کے وضو کققی طققرح وضققو کیققا جققائے‪ ،‬اور‬
‫پھر نہانا ہے۔ ہم اس بات کو پسند کرتے ہیں کہ ہم اس معاملے میں آپ کی اتباع کریں۔‬
‫کسی عالم کو بھی اس بات سے اختلف نہیں ہے کہ مکمل طور پر کسی چیز کے دھل‬
‫جانے کے بعد اس کی پاکیزگی قابل اطمینان ہوتی ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے ک قہ قققرآن ن قے‬
‫دھونے کو فرض کیا ہے اور اس میں مزید اضافے نہیں کئے۔ )اس وجہ سققے غسققل س قے‬
‫پہلے استنجا اور وضو کو ہم اختیاری معاملے کے طور پر لیں گے۔(‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جن صورتوں میں وضو یا غسل لزم ہو جاتققا‬
‫ہے انہیں اپنی سنت میں بیان کر دیا۔ ان صورتوں کا ذکر کتاب اللہ میں نہ تھا۔‬

‫‪83‬‬
‫ایس ے قرآنی احکام جن ک ے بار ے میں سنت میں وضاحت‬
‫کی گئی ک ہ ان کا حکم خاص صورتحال ک ے لئ ے ہے‬
‫وراثت کے احکامات کی وضاحت‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ه وَل َقد ٌ وَل َق ُ‬
‫ه‬ ‫س ل َق ُ‬
‫ك ل َي ْق َ‬ ‫مُرؤٌ هَل َ َ‬ ‫نا ْ‬ ‫ة‪ ،‬إ ِ ْ‬‫م ِفي ال ْك ََلل َ ِ‬ ‫فِتيك ُ ْ‬
‫ه يُ ْ‬‫ل‪ :‬الل ّ ُ‬
‫ك‪ .‬قُ ْ‬ ‫فُتون َ َ‬‫ست َ ْ‬
‫يَ ْ‬
‫ن ل ََها وَل َد ٌ۔‬
‫م ي َك ُ ْ‬ ‫ن لَ ْ‬‫ك‪ ،‬وَهُوَ ي َرِث َُها إ ِ ْ‬ ‫ما ت ََر َ‬ ‫ف َ‬‫ص ُ‬‫ت فَل ََها ن ِ ْ‬ ‫خ ٌ‬ ‫أُ ْ‬
‫لوگ تم سے "کللہ" کے بارے میں سوال کرتے ہیں۔ کہو اللہ تمہیں فتوی دیتا ہے۔ "اگققر‬
‫کوئی ایسا شخص فوت ہو جائے جس کی اولد نہ ہو اور اس کی ایک بہن موجققود ہو‬
‫تو وہ اس کے ترکے سے نصف پائے گی اسی طرح اگر اولد نہ ہو )اور اگر مرنقے والقی‬
‫بہن ہو( تو بھائی اس کا وارث ہو گا۔ )النساء ‪(4:176‬‬
‫مققا ت َقَر َ‬
‫ك‬ ‫م ّ‬
‫ب ِ‬
‫صققي ٌ‬
‫سققاِء ن َ ِ‬ ‫ن َواْل َقَْرب ُققو َ‬
‫ن‪ ،‬وَِللن ّ َ‬ ‫دا ِ‬ ‫ك ال ْ َ‬
‫وال ِق َ‬ ‫ما ت ََر َ‬‫م ّ‬
‫ب ِ‬‫صي ٌ‬ ‫ل نَ ِ‬‫جا ِ‬ ‫ِللّر َ‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬
‫ضا۔‬‫فُرو ً‬ ‫م ْ‬
‫صيًبا َ‬ ‫َ‬
‫ه أوْ كث َُر ن َ ِ‬ ‫من ْ ُ‬
‫ل ِ‬ ‫َ‬
‫ما ق ّ‬ ‫م ّ‬
‫ن ِ‬ ‫ْ‬
‫ن َوالقَرُبو َ‬ ‫دا ِ‬ ‫ال ْ َ‬
‫وال ِ َ‬
‫مردوں کے لئے اس مال میں حصہ ہے جو ان کے والدین اور دوسرے رشققتے داروں نققے‬
‫چھوڑا ہو۔ اسی طرح خواتین کے لئے اس مال میققں حص قہ ہے جققو ان کقے والققدین اور‬
‫رشتے داروں نے چھوڑا ہو‪ ،‬خواہ تھوڑا ہو یا بہت‪ ،‬یہ حصہ )اللہ کی طرف سے( مقرر ہے۔‬
‫)النساء ‪(4:7‬‬
‫ن‬ ‫م ي َك ُ ْ‬‫ن لَ ْ‬ ‫د‪ ،‬فَإ ِ ْ‬ ‫ه وَل َ ٌ‬ ‫ن لَ ُ‬ ‫كا َ‬‫ن َ‬ ‫ك إِ ْ‬ ‫ما ت ََر َ‬ ‫م ّ‬ ‫س ِ‬ ‫سد ُ ُ‬ ‫ما ال ّ‬ ‫من ْهُ َ‬ ‫حدٍ ِ‬ ‫ل َوا ِ‬ ‫وَِل َب َوَي ْهِ ل ِك ُ ّ‬
‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫ل َه ول َد وورث َ َ‬
‫ن ب َعْدِ‬ ‫م ْ‬ ‫س ِ‬ ‫سد ُ ُ‬ ‫مهِ ال ّ‬ ‫خوَةٌ فَِل ّ‬ ‫ه إِ ْ‬‫ن لَ ُ‬ ‫كا َ‬ ‫ن َ‬ ‫ث‪ ،‬فَإ ِ ْ‬ ‫مهِ الث ّل ُ ُ‬ ‫واهُ فَِل ّ‬ ‫ه أب َ َ‬ ‫ُ َ ٌ َ َ ِ ُ‬
‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬
‫فعًققا‬ ‫م نَ ْ‬ ‫ب لكق ْ‬ ‫م أقْقَر ُ‬ ‫ن أي ّهُق ْ‬ ‫م ل ت َد ُْرو َ‬ ‫م وَأب َْناؤُك ْ‬ ‫ن‪ .‬آَباؤُك ْ‬ ‫صي ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صي ّةٍ ُيو ِ‬ ‫وَ ِ‬
‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫ّ‬
‫م‬ ‫جك ْ‬ ‫ما ت ََرك أْزَوا ُ‬ ‫ف َ‬ ‫ص ُ‬ ‫م نِ ْ‬ ‫ما۔ وَلك ْ‬ ‫كي ً‬ ‫ح ِ‬ ‫ما َ‬ ‫ن عَِلي ً‬ ‫ه كا َ‬ ‫ن الل َ‬ ‫ه‪ .‬إ ِ ّ‬ ‫ن الل ِ‬ ‫م ْ‬ ‫ة ِ‬
‫ض ً‬ ‫ري َ‬ ‫فَ ِ‬
‫ن ب َعْ قدِ‬ ‫مق ْ‬ ‫ن ِ‬ ‫ْ‬
‫مققا ت ََرك ق َ‬ ‫م ّ‬ ‫م الّرب ُقعُ ِ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬
‫ن وَلد ٌ فَلك ق ْ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫ن لهُ ّ‬ ‫َ‬
‫ن كا َ‬ ‫د‪ ،‬فَإ ِ ْ‬ ‫َ‬
‫ن وَل ٌ‬ ‫ن لهُ ّ‬‫َ‬ ‫ُ‬
‫م ي َك ْ‬ ‫َ‬
‫نل ْ‬ ‫إِ ْ‬
‫ن۔‬ ‫َ‬
‫ن ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صي َ‬ ‫صي ّةٍ ُيو ِ‬ ‫وَ ِ‬
‫اگر میت صاحب اولد ہو تو اس کے والدین میں سے ہر ایک کے لئے اس کے ترکققے کققا‬
‫چھٹا حصہ ہے اور اگر اس کی اولد نہ ہو اور اس کے والدین ہی وارث ہوں تو ماں کققے‬
‫لئے تیسرا حصہ ہے۔ اور اگر میت کے بہن بھائی ہوں تو ماں چھٹے حصے کی حقققدار ہو‬
‫گی۔ تم نہیں جانتے کہ تمہارے والدین اور اولد میں سے کون بلحاظ نفع تققم سقے زیقادہ‬
‫قریب ہے۔ یہ حصے اللہ نے مقرر کئے ہیں اور اللہ تمام حقیقتوں سے واقققف اور سققاری‬
‫مصلحتوں کا جاننے وال ہے۔ تمہاری بیویوں نے جو کچھ ترکہ چھوڑا ہے‪ ،‬تم ہارے لئے اس‬
‫کا نصف حصہ ہے اگر وہ بے اولد ہوں۔ اولد ہونے کی صورت میققں تققم چوت ھائی حصقے‬
‫کے حق دار ہو جبکہ میت کی کی گئی وصیت پوری کر دی گئی ہو اور اس پققر واجققب‬
‫الدا قرض ادا کر دیا گیا ہو۔ )النساء ‪(12-4:11‬‬
‫ن‬ ‫م وَل َد ٌ فَل َهُ ّ‬
‫ن الث ّ ُ‬
‫مقق ُ‬ ‫ن ل َك ُ ْ‬
‫كا َ‬ ‫م وَل َد ٌ فَإ ِ ْ‬
‫ن َ‬ ‫ن ل َك ُ ْ‬
‫م ي َك ُ ْ‬‫ن لَ ْ‬ ‫ما ت ََرك ْت ُ ْ‬
‫م إِ ْ‬ ‫م ّ‬‫ن الّرب ُعُ ِ‬ ‫وَل َهُ ّ‬
‫َ‬
‫ن۔‬
‫ن ب َِها أوْ د َي ْ ٍ‬ ‫صو َ‬ ‫صي ّةٍ ُتو ُ‬
‫ن ب َعْدِ وَ ِ‬ ‫م ْ‬‫م ِ‬‫ما ت ََرك ْت ُ ْ‬
‫م ّ‬ ‫ِ‬
‫وہ )بیویاں( تمہارے ترکے سے چوتھائی حصے کی حق دار ہوں گی اگقر تقم بقے اولد ہو‬
‫ورنہ صاحب اولد ہونے کی صورت میں ان کا حصہ آٹھواں ہو گا اگر وصیت جو تققم ن قے‬
‫کی تھی‪ ،‬پوری کر دی جائے یا قرض جو تم نے چ ھوڑا ت ھا ادا کققر دیققا جققائے۔ )النسققاء‬
‫‪(4:12‬‬
‫اللہ تعالی نے یہاں جن وارثوں کا ذکر کیا ہے‪ ،‬سنت سے بھی انہی کی وضاحت ہوتی‬
‫ہے۔ ان میں بہن بھائی‪ ،‬اولد‪ ،‬والققدین‪ ،‬رشققتے دار اور شققریک حیققات شققامل ہیققں۔ جققن‬
‫وارثوں کو اللہ کی کتاب میں نام لے کر بیان کیا گیا ہے‪ ،‬یہ وراثققت خققاص ان ہی ک قے لئے‬

‫‪84‬‬
‫ہے۔‬
‫اس میں یہ شرط ہمیں سنت سے ملتی ہے کہ وارث اور وہ شخص جس کی وراثققت‬
‫تقسیم کی جارہی ہے‪ ،‬دونوں کا دین ایک ہی ہونققا چققاہیے۔ ان ک قے مققذہب مختلققف نہیققں‬
‫ہونے چاہییں۔ ان دونوں کو مسلمانوں کے ملک کا شہری ہونا چاہیے۔ ایسے غیققر مسققلم‬
‫جو مسلمانوں کے ملک میں کسی معاہدے کے تحت رہائش پذیر ہیں اور ان کے جققان و‬
‫مال کی حفاظت مسلمانوں کی ذمہ داری ہے‪ ،‬یا پ ھر اگققر میققت اور وارث دونققوں ہی‬
‫مشرک ہوں تو وہ ایک دوسرے کے وارث قرار پائیں گے۔‬
‫سفیان نے زہری سے‪ ،‬انہوں نے علی بن حسین سے‪ ،‬انہوں نے عمققرو بققن عثمققان س قے‬
‫اور انہوں نے اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ سے روایت کی کہ رسول اللہ صققلی الل قہ علی قہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے ارشاد فرمایا‪" :‬مسلمان غیر مسقلم کقا وارث نقہ ہو گقا اور نقہ ہی غیقر‬
‫مسلم مسلمان کا وارث ہو گا۔" )بخاری‪ ،‬مسلم‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ترمذی‪ ،‬ابن ماجہ(‬
‫وارث اور میت دونوں کا مسلمان ہونے کے ساتھ ساتھ آزاد ہونا بھی ضروری ہے۔‬
‫ابن عینیہ نے ابن شہاب سے‪ ،‬انہوں نے سالم سے اور انہوں نے اپنے والد سے روایت کی‬
‫کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" :‬جس نے کوئی غلم خریققدا اور اس‬
‫غلم کی تحویل میں کوئی مال و جائیداد موجود تھا‪ ،‬تو یہ مال بیچنقے والقے کقا ہو گققا‬
‫سوائے اس کے کہ اس تجارتی معاہدے میں اس بات کی وضاحت کر دی جققائے )ک قہ ی قہ‬
‫جائیداد خریدنے والے کی ہو گی۔( )مسلم‪ ،‬ترمذی‪ ،‬نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬احمد‪ ،‬مالک(‬

‫نوٹ‪ :‬حدیث میں ایک بالکل مختلف بات کہی گئی تھی۔ عہد رسققالت میققں دنیققا میققں غلمققی موجققود‬
‫تھی۔ غلم اپنے مالک کی جائیداد کے منیجر کے طور پر بھی کام کیا کرتے تھے۔ اگر کوئی شخص اپنے‬
‫غلم کی خدمات کسی اور شخص کو بیچ دیتا تققو یقہ سققوال پیققدا ہوا کقہ یقہ معققاملہ صققرف غلم کققی‬
‫خدمات سے متعلق ہی ہو گا یا پھر غلم کے زیر تحویل جائیداد بھی اس ڈیل میں شامل ہو گققی۔ اس‬
‫حدیث میں اسی بات کی وضاحت کی گئی ہے کہ اگر ڈیل کے معاہدے میں کچھ متعین نہیں کیا گیققا تققو‬
‫وہ جائیداد پہلے مالک ہی کی ہو گی کیونکہ اسی نے اسے اپنے غلم کی تحویل میں دیا تھا۔‬
‫مالک اپنے غلم کی صرف خدمات کا ہی مالک ہوا کرتا تھا۔ اسلم نے کبھی مالک کو اس کے جققان‬
‫و مال پر تصرف کرنے کا حق نہیں دیا۔ اسلم میں جس طرح ایک مالک کققو غلم کققی جققان لین قے کققا‬
‫حق حاصل نہیں ہے اسی طرح اس کا مال لینے کا حق حاصل بھی نہیں ہے۔ قرآن نے واضققح طققور پققر‬
‫بیان کر دیا ہے کہ اگر کوئی غلم چاہے تو وہ اپنے مالک سے ایک متعین رقم طے کر کقے اس کقے بققدلے‬
‫آزادی خرید سکتا ہے اور مالک پر یہ لزم ہے کہ وہ مکاتبت کے اس معاہدے کقو قبقول کقرے۔ یقہ رققم وہ‬
‫کما کر قسطوں میں بھی ادا کر سکتا ہے اور اگر اس کے پاس مال ہو تو یکمشت بھی دے سکتا ہے۔‬
‫اس سے یہ واضح ہوتا ہے کہ غلم اپنے مال کا خود مالک ہوتا ہے۔‬
‫اس حدیث سے یہ نتائج اخذ کرنا کہ غلم اپنی کمائی ہوئی جائیداد کا مالک نہیں ہو سکتا یققا وہ اپنقے‬
‫والد یا کسی اور رشتے دار کی وراثت میں حصہ نہیں لے سکتا‪ ،‬ہمارے نزدیققک ایققک ظلققم اور کتققاب و‬
‫سنت کی مخالفت ہے۔ امام شافعی کے تمام تر احترام کے بققاوجود ہمیققں اس معققاملے میققں ان س قے‬
‫شدید اختلف رکھتے ہوئے یہ کہنا پڑے گا کہ اس معاملے میں ان کے بیان کردہ نتائج درست نہیں ہے۔‬
‫اسلم نے غلمی کو یک دم ختم کرنے کی بجائے تدریج کا طریقہ کیوں اختیار کیققا‪ ،‬اس کققی بنیققادی‬
‫وجہ یہ تھی کہ غلمی اس دور کی معاشرت میں اس طرح سے رچی بسی ہوئی تھی ک قہ اگققر یققک دم‬
‫تمام غلموں کو آزاد کر دیا جاتا تو اس کا نتیجہ اس ک قے سققوا کچ قھ ن قہ نکلتققا ک قہ بھکققاریوں‪ ،‬چققوروں‪،‬‬
‫ڈاکوؤں اور طوائفوں کا ایک بہت بڑا طبقہ وجود میں آ جاتا۔ غلموں کے ذمے صرف فرائض ہی نہ تھے‬
‫بلکہ ان کے حقوق بھی مقرر تھے۔ ان غلموں کی تمام ضروریات کو پورا کرنا ان کے مالققک کققی ذم قہ‬
‫داری تھی۔ اس صورت میں ہر غلم کی نفسیاتی حالت ایسی نہ تھی کہ وہ آزادی کا طالب ہو کققر ان‬
‫سہولیات کو چھوڑ دیتا۔ اسی وجہ سے دین نے مکاتبت کا قققانون جققاری کیققا تققا کقہ جققو غلم آزادی کققا‬
‫طالب ہو وہ اپنی آزادی خود خرید سکے۔ اس کی مزید تفصیل میرے مضمون "اسلم ن قے غلمققی کققو‬

‫‪85‬‬
‫ایک دم ختم کیوں نہ کیا؟" میں دیکھی جا سکتی ہے۔‬

‫سنت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے وضاحت فرمققا دی ک قہ غلم مققال کققا‬
‫بذات خود مالک نہیں بن سکتا۔ جو کچھ بھی اس کے قبضے میققں ہو وہ اس ک قے مالققک‬
‫کی ملکیت ہی ہو گی۔ مال و جائیداد کی نسبت اس کی طرف اضققافی ہے کیققونکہ ی قہ‬
‫اس کے قبضے میں ہے۔ وہ اس کا مالک نہیں ہے کیققونکہ وہ خققود مملققوک ہے۔ اس کققی‬
‫تجارت ہو سکتی ہے‪ ،‬وہ تحفے میں دیا جا سکتا ہے اور وراثت میں منتقل ہو سققکتا ہے۔‬
‫اللہ تعالی نے مرنے والے کی جائیداد کو اس کے زندہ وارثوں کی طرف منتقل کرنے کققا‬
‫قانون دیا ہے۔ جو کچھ اس کی ملکیت تھا وہ مرنے کے بعققد اس ک قے زنققدہ وارثققوں کققی‬
‫طرف منتقل ہو جائے گا۔‬
‫اگر غلم باپ یا کسی اور رشتے کے باعث وراثت میققں حص قہ دار بن قے گققا تققو وہ اپنققا‬
‫حصہ اپنے مالک کو دے دے گا اگرچہ اس کا مالک مرنے والے کا بققاپ یققا رشققتے دار نہیققں‬
‫ہے۔ ہم غلم کو اس لئے حصہ نہ دیں گے کہ وہ باپ ہے بلکہ ہم اس کے مالک کققو ی قہ حص قہ‬
‫دے دیں گے جس پر کوئی فریضہ نہیں ہے۔ اس طریقے سے ہم اس شخص کققو حققق دے‬
‫رہے ہیں جس کے بارے میں اللہ تعالی نے حق مقرر نہیں کیا ہے اور جیسققا ک قہ میققں ن قے‬
‫‪6‬‬
‫بیان کیا‪ ،‬غلم کو حق سے محروم کر رہے ہیں۔‬
‫ہم کسی ایسے شخص کو وراثت میں شریک نہیں کرتے جو آزاد نہ ہو‪ ،‬مسلمان نہ ہو‬
‫اور مرنے والے کا قاتل نہ ہو۔‬
‫مالک نے یحیی بن سعید سے‪ ،‬انہوں نے عمرو بن شعیب سے روایت کی کہ رسول الل قہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" ،‬قاتل کے لئے وراثت میں کوئی حصہ نہیققں۔" )ابققو‬
‫داؤد‪ ،‬احمد‪ ،‬مالک(‬
‫اس وجہ سے ہم قاتل کو مقتول کا وارث نہیں بنا سکتے۔ ایسے شققخص کققی‪ ،‬جققس نقے‬
‫جان بوجھ کر قتل کر کے اللہ تعالی کی نافرمانی کی ہو اور اس کی ناراضی کا شققکار‬
‫ہوا ہو‪ ،‬کم از کم سزا یہ ہے کہ اسے وراثت سے محروم کققر دیققا جققائے۔ ہمققارے ش قہر اور‬
‫دیگر علقوں کے ایسے اہل علم جن سے میں نے علم حاصل کیا ہے اس معققاملے میققں‬
‫کوئی اختلف نہیں رکھتے کہ صرف آزاد غیر قاتققل مسققلمان ہی دوسققرے مسققلمان کققا‬
‫وارث ہو سکتا ہے۔‬
‫ان کے اس اتفاق رائے سے‪ ،‬جو میں نے اب ھی بیقان کیقا‪ ،‬اس بقات کقی دلیقل ہے کقہ‬
‫لوگوں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کے معاملے میں کبھی اختلف‬
‫نہیں کرنا چاہیے کیونکہ ایسے معاملت جن میں اللہ تعالی کقے نققازل کققردہ احکققام ہوں‪،‬‬
‫سنت رسول اسی مقام پر ہے جس پر یہ احکام ہوں گے۔ جن معاملت میں کتققاب الل قہ‬
‫میں کوئی حکم موجود نہیں ہے‪ ،‬ان معاملت میں سنت قرآن کے مثل ہی ہو گققی۔ اس‬
‫سنت کے لزم ہونے میں کسی عالم کو کوئی شک نہیں ہونا چاہیے کیونکہ اللہ تعالی کے‬
‫احکام اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے احکققام میققں اختلف نہیققں ہو سققکتا‬
‫بلکہ یہ ایک ہی طرز پر حکم جاری کرتے ہیں۔‬
‫تجارت کی بعض صورتوں کی ممانعت‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬
‫من ْك ُ ْ‬
‫م۔‬ ‫ض ِ‬
‫ن ت ََرا ٍ‬
‫جاَرةً عَ ْ‬
‫ن تِ َ‬
‫كو َ‬ ‫ل إ ِّل أ ْ‬
‫ن تَ ُ‬ ‫م ِبال َْباط ِ ِ‬ ‫وال َك ُ ْ‬
‫م ب َي ْن َك ُ ْ‬ ‫َل ت َأك ُُلوا أ ْ‬
‫م َ‬

‫ی ہ نقط ہ نظر ن ہ صرف قرآن و سنت ک ے خلف ہے بلک ہ انسانیت ک ے خلف ب ھی ہے۔‬ ‫‪6‬‬

‫‪86‬‬
‫آپس میں ایک دوسرے کے مال باطل طریقے پر مت کھاؤ‪ ،‬آپققس کققی رضققامندی س قے‬
‫لین دین ہونا چاہیے۔ )النساء ‪(4:29‬‬
‫َ‬ ‫ذ َل َ َ‬
‫م الّرَبا ۔‬
‫حّر َ‬ ‫ه ال ْب َي ْ َ‬
‫ع‪ ،‬وَ َ‬ ‫ل الل ّ ُ‬
‫ح ّ‬
‫ل الّرَبا‪ ،‬وَأ َ‬ ‫ما ال ْب َي ْعُ ِ‬
‫مث ْ ُ‬ ‫م َقاُلوا‪ :‬إ ِن ّ َ‬
‫ك ب ِأن ّهُ ْ‬‫ِ‬
‫یہ اس لئے ہے کہ انہوں نے کہا‪" :‬تجارت تو سود کی طرح ہی ہے جبکہ اللہ نے تجارت کققو‬
‫حلل کیا ہے اور سود کو حرام۔ )البقرۃ ‪(2:275‬‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے تجارت کی متعدد اقسام سے منع فرمایا۔ آپ‬
‫نے سونے کے بدلے سونے کے تبادلے سے منع فرمایا سوائے اس کقے کقہ اس کقی مققدار‬
‫بالکل برابر ہو۔ اسی طرح آپ نےاس طریقے سے سونے ک قے بققدلے چانققدی ک قے تبققادلے‬
‫سے منع فرمایا کہ ایک تو فورا ً دے دیا جائے اور دوسرا کچھ عرصے کے لئے ادھار کر دیا‬
‫جائے۔ آپ نے ایسی تجارت سے بھی منع فرمایا جس کے تبققادلے میققں )ایققک فریققق کققو‬
‫نقصان کا( کوئی خطرہ )‪ (Risk‬ہو یا جس میں بیچنے والے یا خریققدنے والقے سقے کققوئی‬
‫بات چھپائی گئی ہو۔‬
‫سنت سے یہ بات معلوم ہو گئی کہ اللہ تعالی نے ہر طرح کی تجارت کو حلل کر دیقا‬
‫ہے سوائے ان صورتوں کے جنہیں اس نے اپنے نبی صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم کققی زبققان‬
‫سے ممنوع قرار دے دیا ہے۔ اس کے علوہ بھی حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن قے کئی‬
‫قسم کی تجارت کے بارے میں سنت جاری فرمائی۔ مث ً‬
‫ل‪:‬‬
‫• ایک غلم کو بیچا جائے اور اس میں بیچنے وال خریدنے والے سے اس کقا کققوئی‬
‫عیب چھپا لے۔ ایسی صورت میں خریدار اس غلم کو واپس لوٹققا سققکتا ہے اور‬
‫اس عرصے کے دوران وہ غلم کے ذریعے کمائے گئے منافع کققو اپن قے پققاس بطققور‬
‫ہرجانہ رکھ سکتا ہے۔‬
‫• اگر ایک شخص غلم بیچے جس کی تحویل میں کچقھ مققال ہو۔ یقہ مققال بیچنقے‬
‫والے ہی کا ہو گا سوائے اس کے کہ تجارت میققں یقہ شققرط رک ھی جققائے کقہ مققال‬
‫خریدار کی ملکیت ہو گا۔‬
‫• اگر کوئی پھل لگے کھجور کے درخت کو بیچے تو اس پر پہلے سے لگقا ہوا پ ھل‬
‫بیچنے والے ہی کا ہو گا سوائے اس کے کہ سودے یہ میں شرط رکھی جققائے کقہ یقہ‬
‫پھل خریدار کی ملکیت ہو گا۔‬
‫ان احادیث پر عمل کرنا ضروری ہے کیونکہ اللہ تعالی نے انسانوں پر یہ لزم کیققا ہے کقہ‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے احکام کی پیروی کریں۔‬
‫عام فرائض )نماز(‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫موُْقوًتا ۔‬
‫ن ك َِتاًبا َ‬
‫مِني َ‬ ‫ت عََلى ال ْ ُ‬
‫مؤْ ِ‬ ‫صَلةَ َ‬
‫كان َ ْ‬ ‫ن ال ّ‬
‫إِ ّ‬
‫بے شک نماز اہل ایمان پر مقررہ اوقات ہی میں فرض ہے۔ )النساء ‪(4:103‬‬
‫صَلةَ َوآُتوا الّز َ‬
‫كاةَ ۔‬ ‫َ‬
‫موا ال ّ‬
‫وَأِقي ُ‬
‫نماز قائم کرو اور زکوۃ ادا کرو۔ )النساء ‪(4:43‬‬
‫خذ ْ م َ‬
‫م ب َِها ۔‬
‫كيهِ ْ‬ ‫ة ت ُط َهُّرهُ ْ‬
‫م وَت َُز ّ‬ ‫صد َقَ ً‬
‫م َ‬
‫وال ِهِ ْ‬
‫م َ‬
‫نأ ْ‬‫ُ ِ ْ‬
‫ان کے اموال میں سے صدقہ وصول کیجیے اور اس کے ذریعے انہیں پاک کیجیے اور ان‬
‫کا تزکیہ فرمائیے۔ )التوبہ ‪(9:103‬‬

‫‪87‬‬
‫سِبيًل ۔‬
‫طاعَ إ ِل َي ْهِ َ‬
‫ست َ َ‬
‫نا ْ‬
‫م ْ‬ ‫ج ال ْب َي ْ ِ‬
‫ت َ‬ ‫ح ّ‬
‫س ِ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬
‫وَل ِلهِ عَلى الّنا ِ‬
‫لوگوں پر اللہ کے لئے لزم ہے کہ جو بھی اس راہ میں استطاعت رکھتا ہو وہ )اللقہ کقے(‬
‫گھر کا حج کرے۔ )ال عمران ‪(3:97‬‬
‫اور حج کا حکم دیا ہے اور ان سب کی‬ ‫اللہ تعالی نے اپنی کتاب میں نماز‪ ،‬زکوۃ‬
‫وضاحت اپنے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زبان سے فرمائی ہے۔ رسول اللہ صققلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے خبر دی ہے کہ نمازوں کی تعققداد پانققچ ہے۔ آپ ن قے بتایققا ک قہ عققام‬
‫حالت میں ظہر‪ ،‬عصر اور عشا کی رکعتیں چار چار‪ ،‬مغرب کی تین اور فجققر کققی دو‬
‫ہیں۔ آپ نے سنت قائم فرمائی کہ نمازوں میں لزما ً )قرآن مجید کی( قرأت کی جققائے‬
‫گی جو کہ مغرب‪ ،‬عشا اور فجر میں بلند آواز س قے اور ظ ہر و عصققر میققں آہسققتہ آواز‬
‫میں کی جائے گی۔ آپ نے سنت قائم فرمائی کہ ہر نماز کا آغاز لزما ً تکبیر سے ہو گققا‬
‫اور اختتام سلم سے۔ اس میں پہلے تکبیر کہی جائے گی‪ ،‬پھر قرأۃ ہو گی‪ ،‬اس کقے بعققد‬
‫رکوع اور پھر دو سجدے ادا کئے جائیں گے۔ ان کے علوہ نماز میں جققو کچ قھ ہے وہ لزم‬
‫نہیں ہے۔‬
‫آپ نے یہ بھی سنت قائم کی کہ سفر کا ارادہ کرنے کی صورت میں ان نمققازوں کققو‬
‫مختصر کیا جائے گا جن کی رکعتیں چار ہیں جبکہ مغرب اور فجر کو عققام حققالت کققی‬
‫طرح ادا کیا جائے گا )یعنی ان میں کمی نہ کی جائے گی۔( انسان خققواہ مسققافر ہو یققا‬
‫کہیں پر مقیم ہو‪ ،‬وہ یہ سب نمازیں قبلہ رو ہو کققر ک قے ادا کققرے گققا سققوائے اس کقے کقہ‬
‫دشمن کے حملے کا خطرہ ہو۔‬
‫آپ نے یہ سنت قائم فرمائی کہ نفل نمازیں بھی فرض نمازوں ہی کی طرح ادا کققی‬
‫جائیں گی۔ ان کی ادائیگی بھی طہارت‪ ،‬قرأت‪ ،‬رکوع‪ ،‬سجدہ اور حققالت سققفر و حضققر‬
‫میں زمین )نہ کہ کشتی( پر ادائیگی کی صورت میں قبلے کی طرف منہ کئے بغیر جائز‬
‫نہیں ہے۔ نفل نماز کو ایک سوار شخص جس طرف سواری جا رہی ہے‪ ،‬اسققی طققرف‬
‫منہ کر کے ادا کر سکتا ہے۔‬
‫ابن ابی فدیک‪ ،‬ابن ابی ذئب سے‪ ،‬وہ عثمان بن عبداللہ سے‪ ،‬وہ سراقہ سے اور وہ جابر‬
‫بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں‪" :‬نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے غققزوہ‬
‫بنی انمار کے دوران اپنے اونٹ پققر ہی مشققرق کققی جققانب رخ کققر کقے نمققاز ادا کققی۔‬
‫)مسند شافعی‪ ،‬مسند ابی حنیفہ(‬
‫اسی طرز پر مسلم بن خالد الزنجی نے ابو جریج سقے‪ ،‬ان ہوں نقے ابققو زبیققر سقے اور‬
‫انہوں نے جابر رضی اللہ عنہ سے روایت کی ہے۔ راوی کہتے ہیں کہ مجھے یہ یاد نہیققں ک قہ‬
‫انہوں نے بنی انمار کا ذکر کیا تھا یا نہیں یا پھر شاید یہ کہا تھا کہ یہ نماز سققفر میققں ادا‬
‫کی جا رہی تھی۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت قائم فرمائی کہ عید اور استسقاء )بارش‬
‫کی دعا کرنے کے لئے نماز( کی نمازوں میں رکوع و سجود کی تعداد بھی وہی ہو گققی‬
‫)جو عام نمازوں میں ہے( لیکن آپ نے سورج گرہن کی نماز میققں ایققک اضققافی رکققوع‬
‫فرمایا اور ہر رکعت میں دو رکوع کئے۔ یہ حدیث مالک نے یحیی بن سققعید سقے‪ ،‬ان ہوں‬
‫نے عمرہ سے اور انہوں نے سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت کیں۔ اسققی ک قے مثققل‬
‫روایت مالک‪ ،‬ہشام‪ ،‬ان کے والد اور سیدہ عائشہ کے توسط سے ملی ہیں۔ ایک روایققت‬
‫مالک نے زید بن اسلم‪ ،‬عطا بن یسار اور ابن عباس رضی اللہ عنہما س قے روایققت کققی‬
‫ہے۔ سیدہ عائشہ اور ابن عباس رضی اللہ عنہم کی روایتوں کے الفاظ میققں کچ قھ فققرق‬
‫ہے لیکن ان احادیث میں یہ بات واضح ہے کہ سورج گرہن کی نماز دو رکعت ہہہے اور ہ ہر‬
‫رکعت میں ایک اضافی رکوع ہے۔‬

‫‪88‬‬
‫اللہ تعالی نے نماز سے متعلق حکم دیا کہ " بے شک نماز ا ہل ایمققان پققر مقققررہ اوقققات ہی‬
‫میں فرض ہے۔"۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے وضققاحت فرمققائی ک قہ ی قہ مقققررہ‬
‫اوقات کون کون سے ہیں۔ آپ نے ان مقررہ اوقات میں نمازیں ادا کیں۔ غققزوہ احققزاب‬
‫کے دن مسلمان محاصرے میں آ گئے تھے اور نماز ادا کرنے کی پوزیشن میں نہیں تھے‪،‬‬
‫اس لئے آپ نے نمازوں کو اس عذر کی بنا پر موخر کر دیا اور ظہر‪ ،‬عصر‪ ،‬مغرب اور‬
‫عشاء کی نمازوں کو اکٹھا کر کے ادا فرمایا۔‬
‫محمد بن اسماعیل نے ابو فدیک سے‪ ،‬انہوں نے ابن ابقی ذئب سقے‪ ،‬ان ہوں نقے مققبری‬
‫سے‪ ،‬انہوں نے عبدالرح ٰمن بن ابی سعید سے اور انہوں نے اپنے والققد سقے روایققت کققی‬
‫جنہوں نے فرمایا‪ :‬ہم لوگ جنگ خندق کے دن )جنگ کی شدت کقے بقاعث( نمقاز ادا نقہ‬
‫کر سکے تھے یہاں تک کہ مغرب کے بعد رات کو جا کر ہمیں کچھ وقت مل سکا جیسققا‬
‫کہ اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا‪" :‬اللہ ہی مومنوں کققی طققرف سقے جنققگ کرن قے ک قے لئے‬
‫کافی ہو گیا۔" اس وقت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے بلل رضی اللہ عنہ کققو‬
‫بلیا کہ وہ اذان دیں۔ انہوں نے اس حکم کی تعمیل کی۔ پھر آپ ظہر کی نمققاز ک قے لئے‬
‫کھڑے ہوئے اور کیا ہی اچھے طریقے سے نماز ادا کی جیسا کہ آپ اس کے وقت پر کیققا‬
‫کرتے تھے۔ پھر آپ عصر کے لئے کھڑے ہوئے اور ایسقے ہی نمققاز پڑ ھی۔ اس کقے بعققد‬
‫اسی طرح مغرب اور پھر عشا کی نمازیں ادا فرمائیں۔ راوی کہت قے ہیققں ک قہ ی قہ واقع قہ‬
‫"خطرے کی نماز" سے متعلق احکام نازل ہونے سے پہلے کا ہے جب پیدل اور سوار ہر‬
‫طرح سے نماز کی ادائیگی کا حکم دیا گیا۔ )احمد‪ ،‬دارمی‪ ،‬شافعی(‬
‫ابو سعید رضی اللہ عنہ نے یہاں یہ واضح کر دیا کہ نمققازوں کققو قضققا کرنقے کققا یقہ واقعقہ‬
‫"خطرے کی نماز" کے حکم سے نازل ہونے سے پہلے کا ہے۔ جس آیت میں خطققرے کققی‬
‫نماز کا حکم دیا گیا ہے وہ یہ ہے‪:‬‬
‫ذا ضربتم في اْل َرض‪ ،‬فَل َيقس عَل َيك ُقم جنققا َ‬
‫صقَلةِ إ ِ ْ‬
‫ن‬ ‫ن ال ّ‬ ‫مق ْ‬‫صقُروا ِ‬ ‫ق ُ‬ ‫ن تَ ْ‬
‫حأ ْ‬ ‫ْ ْ ُ َ ٌ‬ ‫ْ َ‬ ‫ْ ِ‬ ‫وَإ ِ َ َ َ ْ ُ ْ ِ‬
‫مِبيًنا ۔‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫ُ‬ ‫فت َ‬
‫م عَد ُّوا ُ‬
‫ن كاُنوا لك ْ‬ ‫ري َ‬
‫ن الكافِ ِ‬
‫فُروا‪ .‬إ ِ ّ‬
‫نك َ‬ ‫ذي َ‬
‫م ال ِ‬
‫فت ِن َك ُ‬
‫ن يَ ْ‬
‫مأ ْ‬‫خ ْ ُ ْ‬
‫ِ‬
‫جب تم لوگ سفر کے لئے نکلو تو کوئی حرج نہیں اگر تم نماز میں کمی کر لو )خاص‬
‫طور پر( جبکہ تمہیں اندیشہ ہو کہ انکار کرنے والے تمہیققں سققتائیں گ قے کیققونکہ وہ کھلققم‬
‫کھل تم سے دشمنی پر اترے ہوئے ہیں۔ )النساء ‪(4:101‬‬
‫ك وَل ْي َأ ْ ُ‬ ‫م َ‬ ‫ة‪ ،‬فَل ْت َ ُ‬ ‫َ‬
‫خق ُ‬
‫ذوا‬ ‫مع َ ق َ‬‫م َ‬ ‫من ْهُق ْ‬ ‫ة ِ‬
‫فق ٌ‬‫طائ ِ َ‬ ‫قق ْ‬ ‫صقَل َ‬
‫ّ‬ ‫م ال‬ ‫ت ل َهُ ْ‬
‫م َ‬‫م فَأقَ ْ‬
‫ت ِفيهِ ْ‬ ‫كن َ‬ ‫ذا ُ‬ ‫وَإ ِ َ‬
‫ّ‬
‫صلوا‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫ْ‬ ‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫م‪ ،‬فإ ِ َ‬ ‫َ‬
‫م يُ َ‬ ‫خَرى ل ْ‬ ‫ةأ ْ‬ ‫ف ٌ‬‫ت طائ ِ َ‬ ‫م‪ ،‬وَلت َأ ِ‬‫ن وََرائ ِك ْ‬ ‫م ْ‬
‫دوا فلي َكوُنوا ِ‬ ‫ج ُ‬‫س َ‬ ‫ذا َ‬ ‫حت َهُ ْ‬
‫سل ِ َ‬ ‫أ ْ‬
‫ك۔‬ ‫صّلوا َ‬
‫مع َ َ‬ ‫فَل ْي ُ َ‬
‫)اے نبی!( جب آپ میدان جنگ میں ان )مسلمانوں( کے سققاتھ ہوں اور )حققالت جنققگ‬
‫میں( انہیں نماز پڑھانے کے لئے کھڑے ہوں ایک گقروہ آپ کقے سقاتھ اپنقا اسقلحہ لقے کقر‬
‫)نماز کے لئے( کھڑا ہو۔ جب یہ لوگ سجدہ کر لیققں تققو پیچ ھے چل قے جققائیں اور دوسققرا‬
‫گروہ جس نے ابھی نماز نہیققں پڑ ھی ہے آ کققر آپ کقے سققاتھ نمققاز ادا کریققں۔ )النسققاء‬
‫‪(4:102‬‬
‫مالک نے یزید بن رومان سے‪ ،‬انہوں نے صالح بن خوات اور انہوں نے ایسے صحابہ س قے‬
‫جنہوں نے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ساتھ غزوہ ذات الرقاع میں نماز ادا کققی‬
‫تھی‪ ،‬سے روایت کی‪ :‬ایک گروہ نے رسققول اللقہ کقے سقاتھ صققف بنققا لقی جبکقہ دوسققرا‬
‫دشمن کی طرف متوجہ رہا۔ حضور اس وقت تک کھڑے رہے جب تک جو لوگ آپ کققے‬
‫ساتھ تھے انہوں نے ایک رکعت ادا کر لی۔ اس ک قے بعققد ی قہ لققوگ پلٹ قے اور دشققمن ک قے‬
‫مقابلے پر جا کھڑے ہوئے اور دوسرے گروہ نے آپ کے ساتھ ایک رکعققت ادا کققر لقی جققو‬
‫باقی رہ گئی تھی۔ اس کے بعد حضور نے انتظار فرمایا اور اس گروہ نے اپنے طققور پققر‬
‫دوسری رکعت پوری کر لی۔ اس کے بعد نبی نے سلم پھیر کر نمققاز پققوری کققر لققی۔‬
‫)بخاری‪ ،‬مسلم‪ ،‬نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬مالک(‬

‫‪89‬‬
‫یہی روایت ہم نے ایسے لوگوں سے بھی سنی ہے جنہوں نے اسے عبققداللہ بققن عمققر بققن‬
‫حفص سے روایت کیا‪ ،‬انہوں نے اسے اپنے بھائی عبیداللہ بن عمر سے‪ ،‬انہوں نے قاسققم‬
‫بن محمد سے‪ ،‬انہوں نے صالح بن خوات سے‪ ،‬انہوں نے اپنے والد خوات بن جققبیر سققے‬
‫اور انہوں نے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے یزید بققن رومققان کققی حققدیث کقے مثققل‬
‫روایت کی ہے۔‬

‫نوٹ‪ :‬قرآن مجید میں "نماز خوف" کا یہ طریقہ اس صورت کے لئے بیان کیا گیا ہے کہ اگر دشمن کققے‬
‫حملے کا خطرہ ہو تو امام دو رکعت پڑھائے۔ ایک گروہ امام کے ساتھ ایک رکعت نماز پڑھے اور دوسرا‬
‫پہرہ دے۔ نماز پڑھنے وال گروہ ایک رکعت پڑھ کر پہرہ دین قے چل جققائے اور پہل قے پ ہرہ دین قے وال دوسققری‬
‫رکعت امام کے ساتھ آ کر پڑھ لے۔‬
‫اس اجازت کی وجہ یہ تھی کہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کققے‬
‫ساتھ نہایت عقیدت رکھتے تھے۔ ایسے وقت میں جب جنگ کا میدان گرم ہونے وال ہو اور یہ معلققوم ن قہ‬
‫ہو کہ کون زندہ بچے گا اور کون شہادت سے ہم کنار ہو گا‪ ،‬یہ بڑا مشکل تھا کہ وہ حضور صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم کو چھوڑ کر کسی اور کی امامت میں نماز ادا کریں۔ اس وجہ سے اس طریقے سقے نمقاز‬
‫پڑھنے کی اجازت دی گئی۔‬
‫امام ابو یوسف علیہ الرحمۃ اور فقہاء کے ایک گروہ کا نقطہ نظر یہ ہے کقہ یقہ طریققہ صققرف حضققور‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے ساتھ ہی خاص تھا کیونکہ آپ کے بعد تو متعققدد مرتب قہ جمققاعت کققروا کقے‬
‫نماز ادا کی جا سکتی ہے۔ امام شافعی علیہ الرحمۃ اور فقہا کے دوسرے گروہ کے مطابق یہ طریقہ اب‬
‫بھی قابل عمل ہے اور صرف رسول اللہ کے ساتھ خاص نہیں ہے۔‬
‫یہ واضح رہے کہ نماز خوف کا یہ طریقہ اس صورت میں ہے جب دشمن کے حملے کققا خطققرہ ہو اور‬
‫عمل ً جنگ نہ ہو رہی ہو۔ عمل ً جنگ کی صورت میں جیسے بھی ممکن ہو نماز ادا کر لققی جققائے۔ اکققثر‬
‫فقہاء کے نزدیک اگر نماز کی ادائیگی اشاروں سے بھی ممکن نہ ہو تو اس کی قضققا کققی جققا سققکتی‬
‫ہے۔ امام شافعی کے نزدیک قضا نماز کی اجازت‪ ،‬صلوۃ خوف سے منسوخ ہو چکی ہے۔‬
‫اس سے شریعت میں گہری حکمت کا پتہ چلتا ہے کہ حالت کی تبدیلی کے ساتھ ساتھ شریعت کققے‬
‫احکام بھی بدلتے جاتے ہیں اور دین ہر حالت میں قابل عمل رہتا ہے۔‬

‫اس میں وہی بات بیان کی گئی ہے جو میں اس کتاب میں پہلے بیان کر چکا ہ وں کہ‪:‬‬
‫جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اللہ تعالی کے حکم سے کسی پچھلے حکققم‬
‫کو منسوخ کرنے کے لئے سنت قائم فرمائی تو آپ نے لوگوں پر حجت پوری کرنے کققے‬
‫لئے اس سنت )پر پوری طرح عمل کیا( تاکہ لوگ اب بعد والے حکم پر عمققل کریققں نقہ‬
‫کہ پہلے والے پر۔ اللہ تعالی نے حالت جنگ میں نماز کو قضا کرن قے کققو منسققوخ کققر کقے‬
‫"نماز خوف" کا حکم جاری فرما دیا اور جیسا کہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے حکم دیا کہ نماز کو اپنے وقت ہی میں ادا کیا جائے۔ رسول اللہ صلی اللققہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے نماز موخر کرنے کی اپنی سنت کو اللہ کی کتاب کے حکققم اور خققود‬
‫اپنی سنت سے منسوخ فرما دیا۔ جیسا کہ میں نے بیان کیققا کقہ )خطققرے کققی نمققاز کقے‬
‫احکام نازل ہونے کے بعد( آپ نے اپنے وقت ہی میں نماز ادا فرمائی۔‬
‫مالک نے نافع سے اور انہوں نے ابن عمر رضی اللہ عنہما سے روایققت کققی‪ :‬نققبی صققلی‬
‫اللہ علیہ وسلم کے سامنے خطرے کی نماز کا ذکر ہوا تو آپ ن قے فرمایققا‪" :‬جققب خطققرہ‬
‫بہت زیادہ بڑھ جائے تب بھی نماز ادا کرو خواہ پیدل ہو یا سوار‪ ،‬قبلے کی طرف منہ ہو‬
‫سکے یا نہ ہو سکے۔" )بخاری‪ ،‬مالک(‬
‫ایک اور شخص نے ایسی ہی روایت ابن ابی ذئب سے‪ ،‬انہوں نے زہری سے‪ ،‬ان ہوں ن قے‬
‫سالم سے‪ ،‬انہوں نے اپنے والد سے اور انہوں نے نبی صقلی اللقہ علیقہ وسقلم سقے بیققان‬
‫کی۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ روایت انہوں نے اپنے والد ہی سے روایت کی اور یہ‬
‫نبی صلی اللہ علیہ وسلم تک پہنچتی ہے۔‬
‫جیسا کہ میں نے عرض کیا کہ سنت رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے یہ معلوم ہ وتا‬

‫‪90‬‬
‫ہے کہ ہر حال میں قبلے کی طرف منقہ کققر کقے فققرض نمققاز کققو ادا کرنققا ضققروری ہہہے‪،‬‬
‫سوائے اس کے کہ جب ایسا کرنا ممکن ہی نہ ہو مثل ً شمشیر زنققی‪ ،‬لققڑائی‪ ،‬اور ایس قے‬
‫ہی دیگر مواقع پر جب قبلے کی طرف منہ کرنا ممکن نہ ہو۔ اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ‬
‫نماز کو اپنے وقت میں ترک نہ کیا جائے گا بلکہ جس طرف )اور جیسے( بھی ممکن ہو‪،‬‬
‫منہ کر کے نماز ادا کی جائے گی۔‬
‫زکوۃ‬
‫اللہ تبارک و تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫صَلةَ َوآُتوا الّز َ‬
‫كاةَ ۔‬ ‫َ‬
‫موا ال ّ‬
‫وَأِقي ُ‬
‫نماز قائم کرو اور زکوۃ ادا کرو۔ )البقرۃ ‪(2:43‬‬
‫ن الّز َ‬
‫كاةَ ۔‬ ‫صَلةَ َوال ْ ُ‬
‫مؤُْتو َ‬ ‫ن ال ّ‬
‫مي َ‬
‫قي ِ‬ ‫َوال ْ ُ‬
‫م ِ‬
‫نماز قائم کرنے والے اور زکوۃ ادا کرنقے والقے )ان ہی کققو ہم اجققر دیققں گقے(۔ )النسققاء‬
‫‪(4:162‬‬
‫ن‬
‫من َُعو َ‬
‫ن۔ وَي َ ْ‬
‫م ي َُراُءو َ‬
‫ن هُ ْ‬ ‫ن ۔ ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫هو َ‬
‫سا ُ‬ ‫صَلت ِهِ ْ‬
‫م َ‬ ‫ن َ‬
‫م عَ ْ‬
‫ن هُ ْ‬ ‫ن۔ ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫صّلي َ‬ ‫ل ل ِل ْ ُ‬
‫م َ‬ ‫فَوَي ْ ٌ‬
‫ن۔‬‫عو َ‬ ‫ما ُ‬ ‫ال ْ َ‬
‫ایسے نمازیوں کے لئے ہلکت ہے جو اپنی نمازوں سے ہی غافل ہیں‪ ،‬وہ ریاکققاری کرت قے‬
‫ہیں اور "ماعون" سے منع کرتے ہیں۔ )الماعون ‪(7-107:4‬‬
‫بعض اہل علم کا یہ کہنا ہے کہ یہاں "ماعون" سے مراد زکوۃ ہے۔‬
‫صقَلت َ َ‬ ‫خذ ْ م َ‬
‫ك‬ ‫ن َ‬ ‫ل عَل َي ْهِق ْ‬
‫م؛إ ِ ّ‬ ‫صق ّ‬
‫م ب ِهَققا‪ ،‬وَ َ‬
‫كيهِق ْ‬ ‫ة ت ُط َهُّرهُق ْ‬
‫م وَت َُز ّ‬ ‫صقد َقَ ً‬
‫م َ‬ ‫وال ِهِ ْ‬
‫م َ‬
‫نأ ْ‬ ‫ُ ِ ْ‬
‫م۔‬ ‫ميعٌ عَِلي ٌ‬ ‫س ِ‬ ‫م َوالل ّ ُ‬
‫ه َ‬ ‫ن ل َهُ ْ‬
‫سك َ ٌ‬
‫َ‬
‫)اے نبی!( آپ ان کے اموال میں صدقہ لے کر انہیں پاک کریں اور ان کا تزکی قہ کیجی قے۔‬
‫ان کے حق میں دعا کیجیے کیونکہ آپ کی دعا ان کے لئے باعث سکون ہے اور اللقہ تقو‬
‫سننے جاننے وال ہے۔ )توبہ ‪(9:103‬‬
‫اس آیت میں )زکوۃ کا حکم( بظاہر تو عام اموال کے لئے ہے لیکن اس بات کا احتمققال‬
‫بھی ہے کہ یہ حکم کچھ اموال کے ساتھ خاص ہو۔ سنت سے یہ معلوم ہوتققا ہے زکقوۃ کقا‬
‫حکم بعض مخصوص اموال کے ساتھ خاص ہے۔ مال تو بہت سی اقسام کا ہوتا ہے۔ ان‬
‫میں سے ایک قسم جانور ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اونٹوں اور بھیققڑ‬
‫بکریوں پر زکوۃ لی ہے۔ اور جیسا کہ ہم تک بات پہنچققی ہے‪ ،‬آپ ن قے دوسققرے جققانوروں‬
‫میں سے گائے کو خاص کر کے اس پر زکوۃ عائد کی ہے۔ اس زکوۃ کی شرح اللہ تعالی‬
‫نے اپنے نبی کی زبان سے متعیقن فرمقا دی۔ لوگققوں کقے پقاس گ ھوڑے‪ ،‬گققدھے اور اس‬
‫طرح کے اور جانور بھی ہوتے تھے لیکن رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم ن قے ان پققر‬
‫زکوۃ عائد نہیں فرمائی۔ اس سے یہ سنت قائم ہوئی کہ گھوڑوں پر زکوۃ نہیں لی جققائے‬
‫گی۔ اس سے ہم یہ نتیجہ اخذ کرتے ہیں کہ زکوۃ صرف انہی چیزوں پر ادا کی جائے گققی‬
‫جن پر نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے عائد کرنے کا حکم دیا‪ ،‬دوسری چیزوں پر زکوۃ‬
‫عائد نہیں کی جائے گی۔‬
‫لوگوں کے پاس زرعی پیداوار جیسے کھجور اور انگور وغیرہ ہوتے ت ھے۔ رسققول الل قہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے کھجققور اور انگققور پققر زکققوۃ وصققول فرمققائی۔ آپ نقے اس‬
‫پیداوار کا دس فیصد حصہ بطور زکوۃ مقرر فرمایا جب زمین کو بارش یا چشمے سققے‬
‫سیراب کیا جائے اور پانچ فیصد حصہ اس صققورت میققں مقققرر فرمایققا جققب زمیققن کققو‬
‫کنویں کے پانی سے سیراب کیا جائے۔ بعض اہل علققم نقے کھجققور اور انگققور پققر قیققاس‬

‫‪91‬‬
‫کرتے ہوئے زیتون پر بھی زکوۃ عائد کی ہے۔‬
‫لوگ تو کھجور‪ ،‬انگور اور زیتون کے علوہ اور فصلیں جیسے ناریل‪ ،‬بادام‪ ،‬اور انجیققر‬
‫وغیرہ بھی اگاتے ہیں۔ ان پر رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم نقے زکقوۃ عقائد نہیققں‬
‫فرمائی۔ اس سے ہم یہ نتیجہ اخذ کرتے ہیں کہ اللہ تعالی نے تمام فصلوں پر زکوۃ فرض‬
‫نہیں فرمائی ہے بلکہ بعض مخصوص اشیاء پر زکوۃ عائد کی ہے۔‬
‫اسی طرح لوگ گندم‪ ،‬جو‪ ،‬مکئی اور دیگقر اجنققاس ب ھی کاشققت کرتقے ہیققں۔ ہمیققں‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی حدیث سے معلوم ہوتا ہے کہ ان چیزوں پر بھی‬
‫دخققن‬‫زکوۃ عائد کی جائے گی۔ اسی پر قیاس کرتقے ہوئے ہم سقے پہلقے ا ہل علققم نقے ُ‬
‫علس )گندم کی ایک قسم(‪ ،‬چققاول‬ ‫سلت )جو کی ایک قسم(‪َ ،‬‬ ‫)مکئی کی ایک قسم(‪ُ ،‬‬
‫اور ہر اس چیز پر جو لوگ اگاتے اور کھاتے ہیں‪ ،‬بھی زکوۃ عائد کی ہے۔ مثال کے طققور‬
‫پر روٹی‪ ،‬عصیدہ‪ ،‬ادم )گندم سے تیار کردہ چیزیں(‪ ،‬ستو‪ ،‬مٹر اور پھلیوں پر زکوۃ عققائد‬
‫کی گئی ہے۔ یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے اس حکم پر قیاس ہے کقہ لققوگ‬
‫جو کچھ بھی کھانے کے لئے پیدا کرتے ہیں‪ ،‬اس پر زکوۃ عائد کی جائے گی۔‬
‫نوٹ‪ :‬دور جدید میں مال اور پیداوار کے جو جدید ذرائع پیدا ہو چکے ہیں‪ ،‬ان کے بققارے میققں ا ہل علقم‬
‫نے اجتہاد کرتے ہوئے یہ طے کیا ہے کہ دین میں ان کی مماثل جو چیز پائی جاتی ہے اس پقر زکقوۃ عقائد‬
‫کی جائے گی۔ مثل ً بھینس گائے کی طرح ہے‪ ،‬اس کی زکوۃ گائے کی زکققوۃ کققی شققرح سقے لققی جققائے‬
‫گی۔ اسی طرح بعض علماء نے صنعتی اور سروس انڈسٹری کی پیداوار کو زرعی پیداوار کے مماثل‬
‫قرار دے کر اس پر زرعی پیداوار کی زکوۃ عائد کقی ہے۔ دوسقرے ا ہل علقم نقے صققنعتی پیققداوار کقو‬
‫تجارت کے مماثل قرار دے کر اس پر تجارتی مال کی زکوۃ عائد کی ہے۔ اسی طرح معدنی ذخائر کو‬
‫دفن شدہ خزانوں پر قیاس کرتے ہوئے اس پر علماء نے بیس فیصد زکوۃ عائد کی ہے۔ جیسا کہ حدیث‬
‫میں بیان ہوا ہے کہ گھوڑے پر زکوۃ نہیں ہے۔ اسی پر قیاس کرتے ہوئے استعمال کی گاڑی کو زکوۃ سے‬
‫مستثنی قرار دیا گیا ہے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میں بعض اشیاء پر زکوۃ عائد نہ کئے جانے کی وجہ یہ‬
‫بھی ممکن ہے کہ ان اشیاء کو محفوظ رکھنا ممکن نہ ہو جیسا کہ سبزیاں یا پھر ان اشیاء کی پیداوار‬
‫اتنی کم ہو کہ اس پر زکوۃ عائد کرنا مناسب نہ ہو۔‬

‫اس کے علوہ بہت سی ایسی اشیا بھی ہیں جو لوگ کاشت کرتے ہیں لیکققن رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اور ہمارے علم کے مطابق آپ کے بعد آنے والوں نے ان‬
‫پر زکوۃ عائد نہیں کی۔ اس کی مثال ثفا‪ ،‬اسبیوش‪ ،‬کسبرہ اور عصفر )مصالحوں کققی‬
‫مختلف اقسام( اور اس طرز کی دیگر اجناس ہیں۔ چونکہ ان پر زکقوۃ عقائد نہیقں کقی‬
‫گئی اس لئے یہ اس بات کی دلیل ہے کہ بعض اشیاء پر زکوۃ ہے اور بعض پر نہیں ہے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم نقے چانققدی پققر زکققوۃ عققائد فرمققائی۔ بعققد کقے‬
‫مسلمان )حکمرانوں( نے سونے پر بھی زکوۃ عائد کی۔ اس کی بنیاد یا تو کوئی ایسققی‬
‫حدیث تھی جو ہم تک نہیں پہنچی یا پھر انہوں نے اس بات پر قیاس کر لیا کہ سققونا اور‬
‫چاندی دونوں ہی اسلم کے ظہور سے پہلے بھی اور بعد میں بھی مختلف ممالققک میققں‬
‫کرنسی کی حیثیت رکھتے ہیں جن کے ذریعے لوگ اپنی دولت کو محفققوظ رکھت قے ہیققں‬
‫اور مختلف اشیاء کی قیمت کا تعین کرتے ہیں۔‬
‫لوگوں کے پاس دوسری دھاتیں جیسے پیتل‪ ،‬لوہا اور سیسہ بھی ہوتی ہیں۔ ان پققر نقہ‬
‫تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اور نہ ہی آپ کے بعد کسی )حکمران( ن قے زکققوۃ‬
‫عائد کی۔ اس وجہ سے یہ زکوۃ سے مستثنی ہیں۔ انہیں سونے اور چاندی پر قیاس نہیں‬
‫کرنا چاہیے کیونکہ سونا اور چاندی تو تمام ممالک میں کرنسی کی حیثیت رکھتے ہیققں۔‬
‫انہی کے ذریعے مختلف اشیاء کی قیمتوں کا تعین ہوتا ہے۔ یہ معققاملہ دیگققر د ھاتوں ک قے‬

‫‪92‬‬
‫ساتھ تو نہیں ہے جن کی کسی خاص وقت پر قیمت تول کر متعین کی جاتی ہے۔‬
‫اسی طرح زبرجد اور یاقوت سونے اور چاندی سے بھی زیادہ قیمققتی ہوتے ہیققں۔ ان‬
‫پر نہ تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے زکوۃ عائد نہیں فرمائی اور ہمققارے علققم‬
‫کے مطابق آپ کے بعد کسی )حکمران( نے بھی ایسققا نہیققں کیققا۔ چققونکہ یقہ ایققک خققاص‬
‫قسم کا مال ہے اور بطور کرنسی اسے استعمال نہیں کیققا جاتققا‪ ،‬اس لئے ان پققر زکققوۃ‬
‫عائد نہیں کی گئی۔‬
‫عام علماء نے جانوروں اور نقد رقم کے ضمن میں رسول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم سے جو کچھ روایت کیا ہے اس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ زکوۃ سال میں ایک مرتبہ‬
‫ه " )النعققام ‪(6:141‬‬ ‫صققادِ ِ‬
‫ح َ‬
‫م َ‬
‫ه ي َوْ َ‬
‫ق ُ‬
‫ح ّ‬
‫ہی لی جائے گی۔ اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا " َوآُتوا َ‬
‫یعنی "اللہ کا حق فصل کاٹنے کے دن ادا کرو۔" رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت‬
‫قائم فرمائی کہ زرعی پیداوار کی زکوۃ اللہ تعالی کے حکم کے مطابق فصل کٹنققے کققے‬
‫دن لی جائے گی نہ کہ کسی اور وقت پر۔ آپ نے یہ سققنت ب ھی قققائم فرمققائی کقہ دفققن‬
‫شدہ خزانوں پر بیس فیصد زکوۃ وصول کی جائے گی۔ یہ صرف اسی وقت ہو گقا جققب‬
‫یہ خزانے دریافت ہوں۔‬
‫سفیان زہری سے‪ ،‬وہ سعید بن مسیب سے اور ابو سلمہ سے اور وہ ابوہریرہ رضی اللہ‬
‫عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪ :‬دفققن شققدہ‬
‫خزانوں کی زکوۃ پققانچواں حصقہ )یعنققی بیققس فیصققد( ہے۔ )بخققاری‪ ،‬مسققلم‪ ،‬ترمققذی‪،‬‬
‫نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬مالک(‬
‫اگر سنت سے یہ تفصیلت معلوم نہ ہوتیں تو قرآن کے ظاہری الفاظ سے یہ سمجھا جققا‬
‫سکتا تھا کہ تمام اموال پر زکوۃ عائد کی جائے گی۔ حقیقتا ً زکوۃ تمققام امققوال پققر نہیققں‬
‫بلکہ بعض مخصوص اموال پر عائد کی گئی ہے۔‬
‫حج‬
‫اللہ تعالی نے اس شخص پر حج فرض کیا ہے جو اس کی راہ پائے۔ نبی صققلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم سے روایت کیا گیا ہے کہ "راہ پانے" سے مراد زاد راہ اور سواری ہے۔ رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے حج سے متعلق امور کی وضاحت فرمائی‪ :‬جیسے حققج‬
‫کے اوقات‪ ،‬تلبیہ کا طریقہ‪ ،‬کرنے کے اور بچنے کے احکام جیسے حالت احرام میققں سققلے‬
‫ہوئے کپڑے نہ پہنے جققائیں اور خوشققبو اسققتعمال نقہ کققی جققائے‪ ،‬حققج کقے اعمققال جیسقے‬
‫عرفات کا قیام‪ ،‬مزدلفہ کا قیام‪ ،‬رمی‪ ،‬سر منڈوانا اور طواف کرنا اور دیگر احکام۔‬
‫اگر کوئی شخص اللہ کی کتاب کے ساتھ ساتھ رسول اللہ صلی اللہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم‬
‫کی سنت سے واقف ہو تو جیسا کہ میں نے بیان کیا )وہ دین کے احکام سے ب قے خققبر رہ‬
‫جائے گا(۔ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اللہ تعالی کقے احکققام پققر عمققل کرنقے کققا‬
‫طریقہ بتایا۔ ان احکام میں حلل و حرام کی وضاحت فرمائی‪) ،‬احکام پر عمققل کرنققے‬
‫کے( اوقات بتائے۔ اس سے یہ واضح ہو جاتا ہے کہ اگققر رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کی سنت اللہ کی کتاب کے ساتھ تعلق میں اس مقام پر چند مرتبہ بھی موجود‬
‫ہے تو یہ ہمیشہ اسی مقام پر موجود رہے گی۔‬
‫سنت کبھی بھی کتاب اللہ کے خلف نہیں ہو سکتی۔ اگر کسققی معققاملے میققں کتققاب‬
‫اللہ میں کوئی حکم موجود نہ بھی ہو‪ ،‬سققنت پققر عمققل کرنققا اس وقققت ب ھی لزم ہے۔‬
‫جیسا کہ میں بیان کر چکا ہوں کہ ہم پر اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کو لزم کیا‬
‫گیا ہے۔ یہ جاننا ضروری ہے کہ اللہ نے اپنی مخلوق میں سوائے اپنے پیغمبر کے کسی اور‬
‫کو یہ مقام نہیں دیا ہے۔ ہر شخص کا قول و فعل کتاب اللہ اور پھر سنت رسول اللہ کے‬

‫‪93‬‬
‫مطابق ہی ہونا چاہیے۔ اگر کسی بھی عالم کی رائے اگر رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ‬
‫وسلم کے ارشاد کے خلف ہے‪ ،‬تو یہ جانتے ہی کہ یہ رائے سنت کے خلف ہے‪ ،‬ہر شققخص‬
‫پر یہ ضروری ہے کہ وہ اس رائے کو چھوڑ کر نبی صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم کققی سققنت‬
‫کی پیروی کرے۔ اگر وہ ایسا نہیں کرے گا تو )آخرت میں( اسے جواب دہ ہونا پڑے گا۔‬
‫نوٹ‪ :‬امام شافعی کی اس عبارت سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ ہمارے اسلف کسی شخص کو بھی‪ ،‬خققواہ‬
‫وہ کتنا بڑا عالم کیوں نہ ہو‪ ،‬وہ مقام دینے کو تیار نہ تھے جو صرف اور صرف رسول اللہ صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم کو حاصل ہے کہ آپ کی کسی بات سے اختلف رائے نہیققں کیققا جققا سققکتا۔ آپ کققو یقہ مققام‬
‫صرف اسی وجہ سے حاصل ہے کہ آپ اللہ تعالی کا پیغام پہنچانے والقے ہیققں۔ آپ کقے بعققد کسققی ب ھی‬
‫عالم‪ ،‬پیر یا ولی اللہ کو یہ مقام حاصل نہیں ہے۔ سب اہل علم کی آراء کا قرآن و سنت کققی روشققنی‬
‫میں جائزہ لیا جائے گا اور جو رائے بھی قرآن و سنت کقے خلف ہو گققی‪ ،‬اسقے بل جج ھک رد کقر دیقا‬
‫جائے گا۔‬

‫اسی طرح اللہ تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کقی اطقاعت کقو اپنقے‬
‫بندوں پر لزم کیا ہے اور اس نے اپنی وحی‪ ،‬اپنے دیقن اور دیقن پقر عمقل کرنقے والقوں‬
‫میں آپ کے اس مقام کو اچھی طرح واضح کر دیا ہے۔‬
‫عدت کی مدت‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ر‬ ‫ة أَ ْ‬
‫ش قه ُ ٍ‬ ‫ن أ َْرب َعَق َ‬
‫س قه ِ ّ‬ ‫ن ب َِأن ُ‬
‫ف ِ‬ ‫صق َ‬
‫جققا ي َت ََرب ّ ْ‬
‫وال ّقذين يتوفّقون منك ُقم وي قذ َرو َ‬
‫ن أْزَوا ً‬
‫َ ِ َ َُ َ ْ َ ِ ْ ْ ََ ُ َ‬
‫وَعَ ْ‬
‫شًرا ۔‬
‫تم میں سے جو لوگ فوت ہو جائیں اور ان کققی بیویققاں زنققدہ ہوں تققو وہ اپنقے آپ کققو‬
‫)دوسری شادی سے( چار ماہ دس دن تک روکے رکھیں۔ )البقرہ ‪(2:234‬‬
‫ر‬ ‫ة أَ ْ‬
‫ش قه ُ ٍ‬ ‫ن ث ََلث َق ُ‬
‫م فَعِقد ّت ُهُ ّ‬‫ن اْرت َب ْت ُق ْ‬‫م إِ ْ‬‫سققائ ِك ُ ْ‬
‫ن نِ َ‬
‫مق ْ‬
‫ض ِ‬
‫ِ‬ ‫حي‬ ‫ن ال ْ َ‬
‫م ِ‬ ‫م ْ‬
‫ن ِ‬ ‫َوالّلِئي ي َئ ِ ْ‬
‫س َ‬
‫حضن‪ ،‬وأ ُوَلت اْل َحمال أ َجل ُه َ‬
‫ن۔‬ ‫مل َهُ ّ‬‫ح ْ‬‫ن َ‬‫ضعْ َ‬ ‫ن يَ َ‬ ‫نأ ْ‬ ‫ْ َ ِ َ ُ ّ‬ ‫م يَ ِ ْ َ َ ْ ُ‬ ‫َوالّلِئي ل َ ْ‬
‫تمہاری جن خواتین کا حیض آنا بند ہو چکا ہو‪ ،‬ان )کی عدت( کے معققاملے میققں تمہیققں‬
‫اگر کوئی شک ہو تو ان کی عدت تین ماہ ہے۔ یہی حکم ان خواتین کقے بققارے میققں ہے‬
‫جنہیں ابھی حیض آنا شروع نہیں ہوا۔ اور حاملہ خواتین کی عدت کی حد ی قہ ہے ک قہ ان‬
‫کے ہاں بچے کی ولدت ہو جائے۔ )طلق ‪(65:4‬‬
‫بعض اہل علم کی رائے یہ ہے کہ اللہ تعالی نے بیققوہ خقاتون کقی عققدت چقار مققاہ دس دن‬
‫مقرر کی ہے اور یہ بھی بیان فرما دیا ہے کہ حاملہ خاتون کی عدت وضع حمل تققک ہے۔‬
‫دوسرے احکام کی طرح اسے بھی جمع کیا جائے تو خاتون پر لزم ہے ک قہ وہ ان دونققوں‬
‫احکام پر عمل پیرا ہو۔‬
‫)یہ رائے درست نہیں ہے کیونکہ( سبیعہ بنت حارث رضی اللہ عنہا‪ ،‬جن کے ہاں ان کققے‬
‫شوہر کی وفات کے چند دن بعد بچے کی ولدت ہو گئی تھی‪ ،‬سے رسول اللہ صلی اللہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" :‬تمہارے لئے دوسری شادی کرنا جائز ہے۔ )بخاری‪ ،‬مسلم(" اس سے‬
‫یہ معلوم ہوتا ہے خواہ وفات کا معاملہ ہو یا طلق کا‪ ،‬متعین مدت تک عدت پققوری کرنققا‬
‫اسی خاتون کے لئے ضروری ہے جو حاملہ نہ ہو۔ اگر کوئی خاتون حقاملہ ہو تققو اس کقے‬
‫لئے متعین مدت کا یہ حکم ساقط ہو جاتا ہے )کیونکہ اس کی عدت وضع حمققل ہی ہے‬
‫خواہ وہ اس مدت سے کم ہو یا زیادہ(۔‬
‫وہ خواتین جن سے نکاح کرنے کی اجازت نہیں‬
‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬

‫‪94‬‬
‫ت اْل َِخ‬ ‫م وَب َن َققا ُ‬ ‫خققاَلت ُك ُ ْ‬ ‫م وَ َ‬ ‫مققات ُك ُ ْ‬ ‫م وَعَ ّ‬ ‫وات ُك ُ ْ‬ ‫خ َ‬ ‫م وَأ َ َ‬ ‫م وَب ََنات ُك ُ ْ‬ ‫مَهات ُك ُ ْ‬ ‫مأ ّ‬
‫حرمت عَل َيك ُ ُ‬
‫ْ ْ‬ ‫ُ ّ َ ْ‬
‫ت‬ ‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫ُ‬ ‫ْ‬
‫مهَققا ُ‬ ‫ضققاعَةِ وَأ ّ‬ ‫ن الّر َ‬ ‫مق ْ‬ ‫م ِ‬ ‫وات ُك ْ‬ ‫خ َ‬ ‫م وَأ َ‬ ‫ضعْن َك ْ‬ ‫م اللِتي أْر َ‬ ‫مَهات ُك ْ‬ ‫ت وَأ ّ‬ ‫خ ِ‬ ‫ت ال ْ‬ ‫وَب ََنا ُ‬
‫ن‪،‬فَ قإ ِ ْ‬
‫ن‬ ‫م ب ِهِ ق ّ‬ ‫خلت ُ ْ‬‫ْ‬ ‫م اللِتي د َ َ‬ ‫ّ‬ ‫ُ‬
‫سائ ِك ْ‬ ‫ن نِ َ‬ ‫م ْ‬ ‫م ِ‬ ‫ُ‬
‫جورِك ْ‬ ‫ح ُ‬ ‫م اللِتي ِفي ُ‬ ‫ّ‬ ‫ُ‬
‫م وََرَبائ ِب ُك ْ‬ ‫ُ‬
‫سائ ِك ْ‬ ‫نِ َ‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬
‫م‬ ‫ُ‬
‫صقلب ِك ْ‬ ‫نأ ْ‬ ‫مق ْ‬ ‫ن ِ‬ ‫ذي َ‬‫م الق ِ‬ ‫ُ‬
‫ل أب َْنائ ِك ْ‬ ‫حلئ ِ ُ‬ ‫م‪،‬وَ َ‬ ‫ُ‬
‫ح عَلي ْك ْ‬ ‫جَنا َ‬ ‫ن فَل ُ‬ ‫م ب ِهِ ّ‬ ‫خلت ُ ْ‬ ‫م ت َكوُنوا د َ َ‬ ‫ُ‬ ‫لَ ْ‬
‫ن اْل ُ ْ‬ ‫َ‬
‫مققا۔‬ ‫حي ً‬ ‫فققوًرا َر ِ‬ ‫ن غَ ُ‬ ‫ه ك َققا َ‬ ‫ن الل ّق َ‬ ‫ف‪،‬إ ِ ّ‬ ‫س قل َ َ‬ ‫مققا قَقد ْ َ‬ ‫ن إ ِّل َ‬ ‫ِ‬ ‫خت َي ْق‬ ‫معُققوا ب َي ْق َ‬ ‫ج َ‬ ‫ن تَ ْ‬ ‫وَأ ْ‬
‫م‬‫كقق ْ‬ ‫ل لَ ُ‬ ‫ح ّ‬ ‫م‪،‬وَأ ُ ِ‬ ‫ب الل ّهِ عَل َي ْك ُ ْ‬ ‫م‪،‬ك َِتا َ‬ ‫مان ُك ُ ْ‬ ‫ت أي ْ َ‬
‫َ‬
‫مل َك َ ْ‬ ‫ما َ‬ ‫ساِء إ ِّل َ‬ ‫ن الن ّ َ‬ ‫ْ‬ ‫م‬
‫ت ِ‬ ‫صَنا ُ‬ ‫َ‬ ‫ح‬ ‫م ْ‬ ‫َوال ْ ُ‬
‫َ‬ ‫ما وراَء ذ َل ِك ُ َ‬
‫م‬ ‫مت َعْت ُ ْ‬ ‫س قت َ ْ‬ ‫مققا ا ْ‬ ‫ن‪ ،‬فَ َ‬ ‫حي َ‬ ‫سافِ ِ‬ ‫م َ‬ ‫ن غَي َْر ُ‬ ‫صِني َ‬ ‫ح ِ‬ ‫م ْ‬ ‫م ُ‬ ‫وال ِك ُ ْ‬ ‫م َ‬ ‫ن ت َب ْت َُغوا ب ِأ ْ‬ ‫مأ ْ‬ ‫ْ‬ ‫َ ََ‬
‫ن‬ ‫ق‬ ‫م‬ ‫ه‬ ‫ق‬ ‫ب‬ ‫م‬ ‫ت‬‫ي‬ ‫ق‬ ‫ض‬ ‫را‬ ‫ت‬ ‫قا‬ ‫ق‬ ‫م‬ ‫في‬ ‫م‬ ‫ُ‬ ‫ك‬ ‫ي‬ ‫َ‬ ‫ل‬‫َ‬ ‫ع‬ ‫ح‬ ‫نا‬ ‫ج‬ ‫ل‬ ‫َ‬ ‫و‬ ‫ة‪،‬‬ ‫ً‬ ‫ض‬ ‫ري‬ ‫َ‬ ‫ف‬ ‫ن‬ ‫ُ‬ ‫ه‬ ‫ر‬ ‫جو‬ ‫به منهن َفآتوهُن أ ُ‬
‫ْ ْ ِ َ ََ َ ُْ ْ ِ ِ ِ ْ‬ ‫َ ُ َ َ‬ ‫ّ ُ َ ّ ِ َ‬ ‫ُ‬ ‫ِ ِ ِ ُْ ّ‬
‫ما۔‬ ‫كي‬
‫َ ِ ً َ ِ ً‬ ‫ح‬ ‫ما‬ ‫لي‬ ‫َ‬ ‫ع‬ ‫ن‬ ‫َ‬
‫كا‬ ‫ه‬
‫َ‬ ‫ّ‬ ‫ل‬‫ال‬ ‫ن‬ ‫ف ِ َ ِ ِ ّ‬
‫إ‬ ‫ة‬ ‫ض‬ ‫ري‬ ‫ب َعْدِ ال ْ َ‬
‫حرام کی گئی ہیں تم پر تمہاری مائیں‪ ،‬بیٹیققاں‪ ،‬بہنیققں‪ ،‬پھوپھیققاں‪ ،‬خققالئیں‪ ،‬بھتیجیققاں‪،‬‬
‫بھانجیاں‪ ،‬رضاعی مقائیں‪ ،‬رضقاعی بہنیقں‪ ،‬بیویقوں کقی مقائیں‪ ،‬اور تم ہاری گقود میقں‬
‫پرورش پانے والی تمہاری سوتیلی بیٹیاں۔ اگر تم نے اپنی بیویوں سے خلوت کر لی ہے‬
‫تو سوتیلی بیٹی سے نکاح کرنا تمہارے لئے جائز نہیں ہاں اگر خلوت نہیں ہوئی تققو پ ھر‬
‫کوئی حرج نہیں۔‬
‫تمہارے سگے )صلبی( بیٹوں کی بیویوں )سے نکاح کرنققا( اور دو بہنققوں کققو ایققک سققاتھ‬
‫)نکاح میں( جمع کرنا بھی حرام ہے سوائے اس کے کہ جو کچھ پہلے ہو چکا کیققونکہ الل قہ‬
‫بخشنے وال مہربان ہے۔ دوسروں کے ساتھ بیاہی ہوئی خواتین ب ھی تققم پققر حققرام ہیققں‬
‫سوائے اس کے کہ جو کنیز بن کر تمہارے پققاس آئیقں۔ یقہ اللقہ کققا ققانون ہے جقس کققی‬
‫پابندی کرنا تمہارے لئے لزم ہے۔‬
‫اس کے علوہ جتنی اور خققواتین ب ھی ہیققں )ان سقے نکققاح کرنققا( تم ہارے لئے حلل ہے‬
‫بشرطیکہ تم ان پر )حق مہر کی ادائیگی اور کفالت کر کے( اپنے مال خرچ کرو‪ ،‬انہیں‬
‫حصار نکاح میں محفوظ کققرو نقہ کقہ آزاد شقہوت رانققی کرنقے لگققو۔ اس کقے بعققد جققو‬
‫ازدواجی زندگی کا لطف تم اٹھاؤ‪ ،‬اس کے بدلے انہیں مہر بطققور فققرض ادا کققرو البت قہ‬
‫مہر کا معاہدہ ہو جانے کے بعد اگر آپس کی آزادانہ رضا مندی سے کوئی سققودا تم ہارے‬
‫درمیان ہو جائے تو پھر کوئی حرج نہیں۔ بے شک اللہ )تمہارے ارادوں کو( جاننے وال اور‬
‫حکمت وال ہے۔ )النساء ‪(24-4:23‬‬
‫اس آیت میں دو معنی ہونے کے احتمال ہیں۔ ان میں سے ایک تو یہ ہے کہ اللہ تعالی نققے‬
‫جس خاتون کو مرد کے لئے حرام قرار دے دیا ہے وہ )ہمیشہ کے لئے( حرام ہے۔ جس کے‬
‫بارے میں اللہ تعالی نے کچھ ارشاد نہیں فرمایا وہ اس حکم کی بنیقاد پققر حلل ہے کقہ "‬
‫اس کے علوہ جتنی اور خواتین ب ھی ہیققں )ان س قے نکققاح کرنققا( تم ہارے لئے حلل ہے"۔ یہ آیققت کقا‬
‫ظاہری مفہوم ہے۔‬
‫)اس سے بظاہر یہ غلط فہمی ہو سکتی ہے کہ بیوی کی بہن سے نکاح بھی ہمیشہ کے‬
‫لئے حرام ہے حالنکہ( آیت سے یہ واضح ہے کہ دو بہنوں سے نکاح کی حرمت اپنققی مققاں‬
‫سے نکاح کر لینے کی حرمت کی طرح نہیں ہے۔ جس چیز کو اللہ تعالی نے حلل قققرار‬
‫دیا‪ ،‬وہ حلل ہے اور جس چیز کو حرام قرار دیا‪ ،‬وہ حرام ہی ہے۔ اس ن قے دو بہنققوں کققو‬
‫نکاح میں جمع کرنے کے بارے میں جو کچھ ارشاد فرمایا‪ ،‬وہی منع ہے۔ یہ بات واضح ہے‬
‫کہ انہیں "جمع کرنے" سے منع کیا گیا ہے۔ اپنی اصل میں ان سے علیحدہ علیحققدہ وقققت‬
‫میں )یعنی ایک بہن کے فوت ہونے کے بعد یا اسے طلق دے دینے کے بعد دوسری سققے(‬
‫نکاح کر لینا حلل ہی ہے۔ یہ معاملہ سگی ماں‪ ،‬بیققٹی‪ ،‬پ ھوپھی اور خققالہ کقے بققارے میققں‬
‫نہیں ہے۔ ان سے نکاح کرنا ہر حال میں حرام ہے۔‬
‫اللہ تعالی کے اس ارشاد میں "اس کے علوہ جتنی اور خواتین بھی ہیں )ان سے نکققاح کرنققا(‬
‫تمہارے لئے حلل ہے " میں یہ بتا دیا گیا ہے کہ سققوائے اپنققی اصققل یققا رضققاعی رشققتے میققں‬

‫‪95‬‬
‫حرام کی گئی خواتین کے دوسری خواتین سے ازدواجی تعلقات قائم کرنا صرف رشتہ‬
‫نکاح کے بعد ہی ممکن ہے۔‬
‫کھانے پینے کی ممنوع اشیا‬
‫اللہ تعالی نے اپنے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫َ‬ ‫ما ُأو ِ‬ ‫َ‬
‫ة‬
‫مي ْت َق ً‬
‫ن َ‬‫كو َ‬ ‫ن يَ ُ‬ ‫ه إ ِّل أ ْ‬ ‫م ُ‬‫عم ٍ ي َط ْعَ ُ‬
‫طا ِ‬‫ما عََلى َ‬ ‫حّر ً‬ ‫م َ‬‫ي ُ‬‫ي إ ِل َ ّ‬‫ح َ‬ ‫جد ُ ِفي َ‬‫ل‪َ :‬ل أ ِ‬ ‫قُ ْ‬
‫ل ل ِغَي ْرِ الل ّهِ ب ِهِ۔‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫قا أهِ ّ‬ ‫س ً‬ ‫س أو ْ ف ِ ْ‬
‫ج ٌ‬ ‫ر‪،‬فَإ ِن ّ ُ‬
‫ه رِ ْ‬ ‫زي ٍ‬
‫خن ِ‬ ‫م ِ‬ ‫ح َ‬‫حا أوْ ل َ ْ‬‫فو ً‬‫س ُ‬
‫م ْ‬ ‫ما َ‬‫أو ْ د َ ً‬
‫)اے نبی!( آپ کہیے‪ :‬میرے پاس جو وحی آئی ہے اس میں میں کوئی )کھانے کے قابققل(‬
‫ایسی چیز نہیں پاتا جو کسی کھانے والے پر حرام ہو سوائے اس کے کہ وہ مردار ہو‪ ،‬یققا‬
‫بہایا ہوا خون ہو‪ ،‬یقا خنزیققر کققا گوشققت ہو کقہ وہ ناپقاک ہے یقا )ذبققح کرنقے والقے کققی(‬
‫نافرمانی ہو کہ اس نے اسے اللہ کے علوہ کسی اور ک قے لئے ذبققح کققر لیققا ہو۔ )النعققام‬
‫‪(6:145‬‬
‫اس آیت میں دو معنی ہونے احتمال ہیں۔ ایک تو یہ کہ سوائے اس کے جو اللہ تعققالی نقے‬
‫حرام کیا ہو‪ ،‬کوئی اور چیز ہمیشہ کے لئے حرام نہیں ہے۔ یہ ایسے معققانی ہیققں جققن کققی‬
‫کوئی بھی مخاطب شخص سمجھ بیٹھے گا کہ سوائے اللہ تعالی کی طرف س قے متعیققن‬
‫حرام کردہ اشیاء کے باقی سب حلل ہیں۔ اسی معنی کو سققب س قے زیققادہ واضققح اور‬
‫وسیع کہا جا سکتا ہے۔ لیکن اگر اس آیت کے دوسرے معنی کو مراد لیققا جققائے تققو ا ہل‬
‫علم کو وہی معنی قبول کرنے پڑیں گے جو نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت میں‬
‫بیان فرمائے کہ اللہ تعالی کی مراد یہی ہو سکتی ہے۔‬
‫اللہ کی کتاب اور سنت کے کسی حکم کو اس وقت تک )کسی خاص شخص‪ ،‬گققروہ‬
‫یا صورتحال کے ساتھ( مخصوص قرار نہیں دیا جا سکتا جققب تققک ان دونققوں یققا کسققی‬
‫ایک میں اس کقی کققوئی واضققح دلیققل موجقود نقہ ہو۔ اس وققت تققک کسققی حکقم کققو‬
‫مخصوص قرار نہیں دیا جا سکتا جب تک کہ آیت میں اس بات کا احتمال نہ ہو ک قہ اس‬
‫سے مخصوص مراد ہو سکتا ہے۔ جس آیت میں یہ احتمال نہ ہو‪ ،‬اس ک قے بققارے میققں ی قہ‬
‫نہیں کہا جا سکتا کہ اس کا حکم )کسی خاص شققخص‪ ،‬گققروہ یققا صققورتحال کقے سققاتھ(‬
‫مخصوص ہے۔‬
‫اللہ تعالی کے اس ارشاد کہ ")اے نبی!( آپ کہیے‪ :‬میرے پاس جو وحی آئی ہے اس میققں میققں‬
‫کوئی )کھانے کے قابل( ایسی چیز نہیں پاتا جو کسی کھانے والے پر حرام ہو " میں احتمال ت ھا کقہ‬
‫شاید رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے کسی خاص چیز کے بارے میں پوچھا جققا‬
‫رہا ہے۔ دوسرا احتمال یہ بھی تھا کہ کھانے کی سب ہی چیزیں حلل ہیں )سوائے ان کے‬
‫جو حرام کر دی گئی ہیں(۔ سنت سے اخذ کرتے ہوئے یہی معنی درست ہے نقہ کقہ پہلقے‬
‫وال۔‬
‫سفیان نے ابن شھاب سے‪ ،‬انہوں نے ابو ادریس الخولنی سے اور ان ہوں ن قے ابققو ثعلب قہ‬
‫رضی اللہ عنہ سے روایت کی کہ نبی صلی اللہ علیہ والہ وسققلم ن قے دانتققوں سقے شققکار‬
‫کرنے والے درندوں کا گوشت کھانے سقے منققع فرمایققا۔ )بخققاری‪ ،‬مسققلم‪ ،‬نسققائی‪ ،‬ابققو‬
‫داؤد‪ ،‬ترمذی‪ ،‬ابن ماجہ‪ ،‬احمد(‬
‫مالک نے اسماعیل بن ابو حکیم سے‪ ،‬انہوں نے عبیدہ بن سققفیان سقے الحضققرمی سقے‬
‫اور انہوں نے ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت کی کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ن قے‬
‫ارشاد فرمایا‪ " :‬دانتوں سے شکار کرنے والے درنققدوں کققا کھانققا حققرام ہے۔" )مسققلم‪،‬‬
‫نسائی‪ ،‬ابن ماجہ‪ ،‬مالک(‬

‫نوٹ‪ :‬اللہ تعالی نے انسان کو خبیث اور طیب اشیاء کا شعور دیا ہے۔ انسانوں کی غالب اکثریت اپنی‬

‫‪96‬‬
‫فطرت کی بنیاد پر یہ جانتی ہے کہ کون سی چیز کھانے کی ہے اور کون سی نہیققں۔ رسققول اللقہ صقلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اسی فطرت کو بیان کرتے ہوئے فرمایا کہ درندوں کا گوشققت کھانققا جققائز نہیققں‬
‫کیونکہ یہ خبیث چیز ہے۔ یہ بیان فطرت اتنا واضح ہے کہ غیققر مسققلموں کققی غقالب اکققثریت ب ھی شققیر‬
‫چیتے یا عقاب وغیرہ کا گوشت نہیں کھاتی۔‬

‫بیوہ خاتون کے لئے حالت عدت میں ممنوعہ احکام‬


‫اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ر‬
‫شه ُ ٍ‬‫ة أَ ْ‬
‫ن أ َْرب َعَ َ‬
‫سه ِ ّ‬‫ف ِ‬ ‫ن ب َِأن ُ‬
‫ص َ‬‫جا ي َت ََرب ّ ْ‬
‫وال ّذين يتوفّون منك ُم ويذ َرو َ‬
‫ن أْزَوا ً‬‫َ ِ َ َُ َ ْ َ ِ ْ ْ ََ ُ َ‬
‫َ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬ ‫ذا بل َغْ ق َ‬
‫ن‬‫س قه ِ ّ‬
‫ف ِ‬ ‫ن فِققي أن ُ‬ ‫مققا فَعَل ق َ‬ ‫م ِفي َ‬ ‫ُ‬
‫ح عَلي ْك ق ْ‬ ‫ن فََل ُ‬
‫جن َققا َ‬ ‫جل َهُ ق ّ‬‫نأ َ‬ ‫َ‬ ‫ش قًرا فَ قإ ِ َ َ‬
‫وَعَ ْ‬
‫خِبيٌر ۔‬
‫ن َ‬ ‫ُ‬
‫ملو َ‬ ‫ما ت َعْ َ‬‫ه بِ َ‬ ‫ّ‬
‫ف‪َ،‬والل ُ‬ ‫معُْرو ِ‬ ‫ِبال ْ َ‬
‫تم میں سے جو لوگ فوت ہو جائیں اور ان کققی بیویققاں زنققدہ ہوں تققو وہ اپنقے آپ کققو‬
‫)دوسری شادی سے( چار ماہ دس دن تک روکے رکھیں۔ پ ھر جققب یقہ مققدت پققوری ہو‬
‫جائے تو اگر وہ معروف طریقے سے اپنے متعلق کوئی فیصلہ کر لیققں‪ ،‬تققم پققر اس کققی‬
‫کوئی ذمہ داری نہیں ہے۔ جو کچھ تم کرتے ہو اللہ تققو اس سقے بققاخبر ہی ہے۔ )البقققرہ‬
‫‪(2:234‬‬
‫اللہ تعالی نے یہاں بیوہ خاتون کی عدت کو بیان کر دیا ہے۔ عدت کی مدت پققوری ہونے‬
‫کے بعد وہ دستور کے مطابق اپنے متعلق جو فیصلہ ب ھی کریققں‪ ،‬اس میققں کققوئی حققرج‬
‫نہیں ہے۔ یہاں عدت کے دوران کسی اور کام کے ممنوع ہونے کا ذکر نہیققں کیققا گیققا ہے۔‬
‫آیت کے ظاہری مفہوم سے تو یہی سمجھ میں آتا ہے کقہ بیققوہ خققاتون عققدت کقے دوران‬
‫دوسری شادی کرنے سے اجتناب کرے اور اپنے شوہر کے گھر ہی میں رہے۔‬
‫اس حکم میں یہ احتمال بھی ہے کہ وہ خاتون نہ صرف دوسققری شققادی سقے اجتنققاب‬
‫کرے بلکہ اس مدت کے دوران دوسرے ایسے کاموں سے بھی پرہیز کققرے جققو پہل قے اس‬
‫کے لئے جائز تھے جیسا کہ بناؤ سنگھار کرنا‪ ،‬خوشبو لگانا وغیرہ۔ رسول الل قہ صققلی الل قہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت قائم فرمائی کہ بیوہ خاتون عدت کے دوران خوشبو وغیرہ سے‬
‫بھی پرہیز کرے۔ خاتون کے لئے خوشبو وغیرہ سے اجتناب کققا حکققم ایسققا حکققم ہے جققو‬
‫سنت کے ذریعے اس پر لزم ہوا جبکہ دوسری شادی سے رکنا اور شققوہر ک قے گ ھر ہی‬
‫میں رہنے کا حکم کتاب اللہ اور پھر سنت دونوں سے معلوم ہوا۔‬
‫اس معاملے میں سنت نے اللہ تعالی کے حکم کی وضاحت کر دی ہے کہ خاتون کس‬
‫طرح سے خود کو روکے رکھے۔ یہ ایسا ہی ہے جیسا کہ نماز‪ ،‬زکوۃ اور حققج ک قے معققاملے‬
‫میں سنت نے اللہ کے احکام کی وضاحت کی ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالققہ وسققلم‬
‫نے ایسے معاملت میں بھی سنت قائم فرمائی جس میں اللہ تعالی کا حکم موجود نققہ‬
‫تھا۔‬

‫‪97‬‬
‫حصصصص ہ سصصصوم‪:‬‬
‫سنت‬
‫یہ حصہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے ثابت شدہ سنت اور حدیث سے متعلققق‬
‫اصولوں پر مشتمل ہے۔ اس حصے میں امام شافعی نے یہ اصول بیان کیے ہیں‪:‬‬
‫•اللہ کے دین کا معیار رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کققی ذات ہے۔ رسققول‬
‫کی حیثیت سے جو احکام آپ نے دیے انہیں قبول کرنا ہر مسققلمان ک قے لئے لزم‬
‫ہے۔‬
‫•رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جن کاموں سے منع فرمایا‪ ،‬ان سے رکنا‬
‫ضروری ہے۔‬
‫• آپ نے بعض ایسی چیزوں سے منع فرمایا جو ہمیشہ کے لئے حرام ہیں اور بسققا‬
‫اوقات بعض کاموں س قے آپ ن قے کسققی مخصققوص صققورت حققال ہی میققں منققع‬
‫فرمایا۔ ابدی حرام کاموں سے اجتناب کرنا ہمیشہ ضققروری ہے لیکقن مخصققوص‬
‫حالت کی ممانعتوں سے رکنا صرف انہی مخصوص حالت ہی میں ضروری ہے۔‬
‫پہلی قسم کی مثال چوری یا شققراب ہے۔ دوسققری قسققم کققی مثققال روزے کققی‬
‫حالت میں ازدواجی تعلقات قائم کرنا ہے۔‬
‫• احادیث کی روایت میں بسا اوقات کچھ مسققائل پیققدا ہو جققاتے ہیققں جققس کقے‬
‫باعث روایتوں میں تضاد نظر آتا ہے۔ کب ھی یقہ تضققاد محققض راویققوں کققی غلققط‬
‫فہمی کے باعث پیدا ہوتا ہے اور کبھی ایک حدیث دوسری سے منسوخ ہوا کرتققی‬
‫ہے۔‬
‫• حدیث کبھی بھی قرآن کے مخالف نہیں ہو سققکتی۔ حققدیث صققرف اور صققرف‬
‫قرآن کی وضاحت کرتی ہے۔‬
‫• بعض اوقات روایتوں میں ایک بات جزوی طور پر بیان کی گئی ہوتی ہے جققس‬
‫کی وجہ سے بظاہر احادیث میں اختلف محسوس ہوتا ہے۔ اگر اس موضوع سقے‬
‫متعلق تمام روایتوں کو اکٹھا کیا جائے تو پ ھر پققوری بققات درسققت طققور سققمجھ‬
‫میں آ جاتی ہے۔‬
‫• احادیث میں بھی کچھ احادیث کا حکم عمومی نققوعیت کققا )عققام( ہوتققا ہے اور‬
‫کچھ کا تعلق کسی مخصوص صورت حال سے )خاص( ہوا کرتا ہے۔ اس بقات کقا‬
‫تعین بہت ضروری ہے۔‬
‫• اگر ایک حدیث دوسری حدیث سے منسوخ ہو تو ہم اس حکم کو قبول کر لیققں‬

‫‪98‬‬
‫گے جو بعد میں دیا گیا ہو۔‬
‫• اگر دو احادیث ایک دوسرے کے متضاد پائی جائیں‪ ،‬ان میں سے کسی ایققک کققو‬
‫ناسخ اور دوسری کو منسوخ قرار بھی نہ دیققا جقا سقکے اور اس تضققاد کقو رفقع‬
‫کرنا ممکن نہ ہو تو پھر ایک حدیث کو چھوڑ کر دوسری زیادہ مسققتند حققدیث کققو‬
‫قبول کیا جائے گا۔ اس ترجیح کے لئے قرآن‪ ،‬دیگر احادیث اور عقل عامہ کو بنیاد‬
‫بنایا جائے گا۔ اس کی تفصیل کچھ یوں ہے‪:‬‬
‫‪ ‬سب سے پہلے دونوں احادیث کو قققرآن پققر پیققش کیققا جققائے گققا اور جققو‬
‫حدیث بھی کتاب اللہ کے زیادہ موافق ہو گی اسے ترجیح دیت قے ہوئے اس قے‬
‫اختیار کر لیا جائے گا۔‬
‫‪ ‬قابل ترجیح روایت وہی ہو گی جسے کقے راوی زیقادہ جقانے پہچققانے ہیققں‬
‫اور اپنے علم اور احادیث کو محفوظ کرنے کے معاملے میققں زیققادہ ش قہرت‬
‫یافتہ ہیں؛‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جو ایک کی بجائے دو یا زیادہ ذرائع سے ہم‬
‫تک پہنچی ہو گی۔ اس کی وجہ ہے کہ احادیث کو محفوظ کرن قے کققا اہتمققام‬
‫زیادہ لوگ کم کی نسبت بہتر انداز میں کر سکتے ہیں؛‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جو کتاب اللہ کے عام معققانی س قے بحیققثیت‬
‫مجموعی زیادہ قریب ہو گی یا پھر رسول اللہ صلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم‬
‫کی دوسری سنتوں کے زیادہ قریب ہو گی۔‬
‫وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جو اہل علم میں زیادہ جانی پہچانی ہے؛‬ ‫‪‬‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جو قیاس )اور عقل( ک قے زیققادہ قریققب ہو‬
‫گی؛‬
‫‪ ‬وہ حدیث قابل ترجیح ہو گی جس پر صحابہ کرام رضققی اللقہ عن ہم کققی‬
‫اکثریت عمل کرتی ہوگی۔‬
‫• بسا اوقات احادیث میں کوئی حقیقی تضاد نہیں ہوتا۔ یہ محض بات کققو صققحیح‬
‫طور پر نہ سمجھنے کے باعث محسوس ہوتا ہے۔ احققادیث کققا مطققالعہ اگققر دقققت‬
‫نظر سے کیا جائے تو یہ تضاد دور ہو جاتا ہے۔‬
‫• بعض اوقات ایک حدیث میں ایک حکم دیا گیا ہوتا ہے لیکن دوسری حدیث سققے‬
‫یہ واضح ہو جاتا ہے کہ یہ حکم "لزمی یا واجب" نہیں ہے بلکہ ایک افضل عمل ہے۔‬
‫اس کی مثال جمعے کے دن غسل کرنا ہے۔‬
‫• احادیث کو ان کے ظاہری اور عمومی مفہوم میں قبول کیا جائے گا۔ اگر کققوئی‬
‫دلیل موجود ہو جس سے یہ معلوم ہو کہ اس حدیث میں مجازی مفہوم مققراد ہے‬
‫یا پھر یہ حکم کسی مخصوص صورتحال کے لئے ہے تب اس حدیث کو مجازی یققا‬
‫خاص مفہوم میں قبول کیا جائے گا۔‬
‫• اھل علم پر یہ لزم ہے کہ اگر انہیں کقوئی دو ایسقی احقادیث مقل جقائیں تقو ان‬
‫میں مطابقت پیققدا کرنقے )‪ (Reconciliation‬کققی کوشققش کریققں‪ ،‬اگققر انہیققں اس‬
‫مطابقت کی کوئی بنیاد مل جائے‪ ،‬نہ کہ انہیققں )فققورا ً ہی( متضققاد قققرار دے دیققں‬
‫جبکہ ان کی تطبیق کا امکان موجود ہو۔‬

‫‪99‬‬
‫• اگر ان احادیث کو ایک دوسرے کے مطابق کرنا ممکققن ہو یققا ایسققا کرنقے کققی‬
‫کوئی بنیاد موجود ہو اور ایک حدیث دوسری کی نسبت زیادہ مضققبوط نقہ ہو تققو‬
‫ان احادیث کو متضاد قرار دینا درست نہیں۔ متضاد روایات وہ ہوتی ہیققں جنہیققں‬
‫ایک دوسرے سے ہم آہنگ کرنا ممکن ہی نہ ہو اور ان میں لزما ً ایک کو ترک کققر‬
‫دینا پڑے۔‬
‫• ایک شخص کسی ایک شخص سے اس طرح حدیث کو روایت کققرے کقہ وہ نققبی‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم یا آپ کے کسی صحابی تک جا پہنچقے تققو یقہ خققبر واحققد‬
‫کہلتی ہے۔ خبر واحد کو قبول کرنا ضققروری ہے اگققر اس میققں یقہ شققرائط پققائی‬
‫جائیں۔‬
‫‪ ‬حدیث کو بیان کرنے وال راوی اپنے دین کے معققاملے میققں قابققل اعتمققاد‬
‫شخص ہو۔‬
‫حدیث کو منتقل کرنے میں اس کی شہرت ایک سچے انسان کی ہو۔‬ ‫‪‬‬
‫جو حدیث وہ بیان کر رہا ہو‪ ،‬اسے سمجھنے کی عقل رکھتا ہو۔‬ ‫‪‬‬
‫‪ ‬الفاظ کی ادائیگی کے نتیجے میں معانی کی جققو تبققدیلی ہو جققاتی ہو‪،‬‬
‫اس سے واقف ہو۔‬
‫‪ ‬جن الفققاظ میققں وہ حققدیث کققو سققنے‪ ،‬ان ہی میققں آگقے بیققان کرنقے کققی‬
‫استطاعت رکھتا ہو نہ کہ جو سنے اپنے الفاظ میققں بیققان کققر دے۔ اس کققی‬
‫وجہ یہ ہے کہ جب حدیث کا صرف مفہوم بیان کیا جققائے گققا اور بیققان کرنقے‬
‫والے شخص کو یہ علم نہیں ہو گا کہ )حدیث کقا محقض مف ہوم بیقان کرنقے‬
‫سے( معنی کس طرح تبدیل ہو جایا کرتے ہیں تو یہ ب ھی ممکققن ہے ک قہ وہ‬
‫کسی حلل حکم کو حرام میں تبدیل کر دے۔ اگر حدیث کو لفظ بققہ لفققظ‬
‫منتقل کیا جائے گا تو اس میں تبدیلی کا کوئی خطرہ نہیں رہے گا۔‬
‫‪ ‬اگر وہ حدیث کو اپنی یادداشت کے سہارے منتقل کر رہا ہے تققو یقہ ب ھی‬
‫ضروری ہے کہ وہ حدیث کو اچھی طققرح یققاد کرن قے وال ہو یعنققی اس کققی‬
‫یادداشت کمزور نہ ہو۔‬
‫‪ ‬اگر وہ حدیث کو لکھ کر منتقل کر رہا ہو تققو اس صققورت میققں ی قہ ب ھی‬
‫ضروری ہے کہ اس نے جو کچھ لکھا ہو وہ خود اسے یاد رکھنے وال ہو۔‬
‫‪ ‬اگر اس حدیث کو دوسرے حفاظ ب ھی محفققوظ کققر ر ہے ہوں تققو اس‬
‫شخص کی بیان کردہ حدیث ان افراد کی بیان کردہ حدیث کے موافق ہونا‬
‫ضروری ہے۔‬
‫‪ ‬راوی "تدلیس" کے الزام سے بری ہو۔ تدلیس یہ ہے ک قہ وہ یقہ ک ہہ دے ک قہ‬
‫میں نے حدیث کو فلں سے سنا ہے جبکہ اس کی اس شخص سے ملقات‬
‫نہ ہوئی ہو اور اس نے اس سے حدیث کو اس سے سنا نہ ہو۔ تققدلیس ایققک‬
‫دھوکا ہے۔ تدلیس کرنے والے کی روایت کو قبول نہ کیا جائے گا۔‬
‫‪ ‬راوی نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے ایسی بات منسوب کققر دے جققو‬
‫کہ قابل اعتماد راویوں کی بیان کردہ حدیث کے خلف ہو۔‬
‫یہی تمام خصوصیات اس راوی سے اوپر والے راویققوں میققں ب ھی پققائی‬ ‫‪‬‬

‫‪100‬‬
‫جانا ضروری ہے جن سے یہ شخص روایت کر رہا ہے یہاں تک کہ حدیث نبی‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم یققا آپ کقے کسققی صققحابی تققک پہنققچ جققائے ج ہاں‬
‫روایت کا سلسلہ ختم ہو رہا ہے۔ چونکہ راویوں کی اس زنجیر میں موجود‬
‫ہر شخص اس حدیث کو پیش کقر رہ ہا ہہہے اس وجقہ سقے اوپقر بیقان کقردہ‬
‫صفات کا ان میں سے ہر شخص میں موجود ہونا ضروری ہے۔‬
‫‪ ‬راوی تعصب کا شکار نہ ہو۔ اگر وہ کسی بات کے بارے میں متعصب ہے‬
‫اور اس کے حق یا مخالفت میں حدیث پیش کر رہا ہے تو اس کی حققدیث‬
‫قبول کرنے میں احتیاط کی جائے گی۔‬
‫‪ ‬راوی اگققر کسققی ایسقے معقاملے میقں حققدیث پیققش کققر ر ہا ہے جسقے‬
‫سمجھنے کی اس میں اہلیت نہیں ہے تو اس کققی حققدیث کققو قبققول کرن قے‬
‫میں بھی احتیاط کی جائے گی۔‬
‫راوی حدیث بیان کرنے میں کثرت سے غلطیاں کرنے وال نہ ہو۔‬ ‫‪‬‬
‫• اگر ایک راوی کی بیان کردہ حدیث )خبر واحد( ان شرائط پر پورا اترتی ہے تققو‬
‫اسے قبول کیا جائے گا اور یہ ہر اس شخص کے لئے حجققت ہو گققی جققس تققک یقہ‬
‫حدیث پہنچی ہے۔‬
‫• کوئی شخص کتنا ہی بلند مرتبہ کیوں نہ ہو‪ ،‬اس کی رائے کققو حققدیث ک قے خلف‬
‫قبول نہ کیا جائے گا۔ اگر کوئی شخص حدیث کے خلف عمل کر ر ہا ہو اور اس‬
‫تک وہ حدیث پہنچ جائے تو اس پر لزم ہے کہ وہ اپنا عمل ترک کر کققے حققدیث پققر‬
‫عمل کرے۔‬
‫• اگر کوئی حدیث ایک سے زائد راویوں کے توسط سے پہنچی ہو تو اس کا ثبوت‬
‫مزید مضبوط ہو جاتا ہے اور حدیث کے دیگر پہلوؤں کققی وضققاحت ب ھی ہو جایققا‬
‫کرتی ہے۔‬
‫• حدیث سے اخذ کردہ احکقام کققو تققرک کرنقا درسققت نہیققں ہے۔ یقہ صققرف اسقی‬
‫صورت میں جائز ہے اگر حدیث بیان کرنے وال کوئی راوی ناقابل اعتمققاد ہو‪ ،‬یققا‬
‫حدیث میں کوئی ایسی بات ہو جو دوسری صحیح احادیث کے خلف ہو یققا پ ھر‬
‫حدیث کی ایک سے زیادہ توجیہات ممکن ہوں۔‬
‫• منقطع حدیث ایسی حدیث کو کہتے ہیققں جققس کققا سلسققلہ روایققت رسققول اللقہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم تک مل ہوا نہ ہو بلکہ اس میں سے ایققک یققا کئی راویققوں‬
‫کے نام نامعلوم ہوں۔ منقطع حدیث کو عام طور پر قبول نہیں کیا جاتا۔ اسے ان‬
‫صورتوں میں قبول کیا جا سکتا ہے‪:‬‬
‫‪ ‬حدیث کے دیگر ذرائع پر غور کیا جائے گا۔ اگر اسی معنی کی ایققک اور‬
‫حدیث دوسرے سلسلہ سند میں حدیث کو محفوظ رکھنے والے راویوں نے‬
‫روایت کی ہے اور اس کی سند رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم تققک‬
‫پہنچ رہی ہے تو اس سے اس منقطع حدیث کے بارے میققں ب ھی معلققوم ہو‬
‫جائے گا کہ یہ حدیث بھی قابل قبول اور صحیح ہے۔‬
‫‪ ‬یہ دیکھا جائے گا کہ اس منقطع حدیث کو کسی دوسققرے ایسقے شققخص‬
‫نے بھی روایت کیا ہے جس کی احادیث عام طور پر اہل علققم ک قے نزدیققک‬
‫قابل قبول ہوتی ہیں۔ اگر ایسی بات ہو تققو اس حققدیث کققو قبققول کققر لیققا‬

‫‪101‬‬
‫جائے گا اگرچہ یہ پہلے نکتے میں بیان کئے گئے طریقے سے ثابت شدہ حدیث‬
‫کی نسبت کمزور درجے کی ہو گی۔‬
‫‪ ‬اگر ایسا بھی نہ ہو تو یہ دیکھا جائے گا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیققہ و ٰالققہ‬
‫وسلم کے کسی صحابی کا قول اس حدیث میں کی گئی بات کے مطابق‬
‫ہے۔ اگر وہ قول رسول اللہ صلی الل قہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم س قے منسققوب اس‬
‫حدیث کے مطابق ہے تو اس سے یہ کہا جا سکتا ہے کہ اگرچہ یہ ایک منقطققع‬
‫روایت ہے لیکن اپنی اصل میں درست ہے۔‬
‫‪ ‬اگر اھل علم کی اکثریت عام طور پر حضور صلی اللہ علیہ و ٰالقہ وسققلم‬
‫سے منسوب اس منقطع روایت سے ملتے جلتے مفہوم کے مطققابق فتققوی‬
‫دیتے ہیں تو اس کا بھی یہی معاملہ ہے۔‬
‫‪ ‬ان صورتوں میں اس منقطع حدیث پر اعتبار کیا جائے گا اگققر اس کققے‬
‫روایت کرنے والے حضرات گمنام نہ ہوں اور نہ ہی ان سے روایت کرنے پققر‬
‫کوئی اعتراض کیا گیا ہو۔ اس صورت میں ان کی روایت کے درست ہونے‬
‫پر اعتماد کیا جا سکتا ہے۔‬
‫• رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی کوئی ایسی حدیث نہیققں ہے جققس کقے‬
‫خلف مسلمانوں کا اجماع ہو گیا ہو۔ ایک حدیث کے بارے میں ا ہل علققم میققں یقہ‬
‫اختلف ہو سکتا ہے کہ وہ مستند حدیث ہے یا نہیں۔‬

‫‪102‬‬
‫باب ‪ :7‬رسول الل ہ صلی الل ہ علی ہ و ٰال ہ‬
‫وسلم ک ے احکامات کی حجیت قبول‬
‫کرن ے کی ذم ہ داری‬
‫اللہ تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالقہ وسققلم کققو اپنققا دیققن‪ ،‬احکامققات اور کتققاب‬
‫پہنچانے کے لئے مبعوث فرمایا۔ اس نے آپ کی حیثیت کو واضح کر دیققا کقہ آپ اس کقے‬
‫دین کا معیقار ہیقں۔ اللقہ تعقالی نقے آپ کقی اطققاعت کققو فققرض ققرار دیققا اور آپ کقی‬
‫نافرمانی کو حرام کر دیا۔آپ کی فضیلت کو اس طرح سے واضح کققر دیققا ک قہ الل قہ پققر‬
‫ایمان لنے کے ساتھ ساتھ رسول پر ایمان لنا بھی ضروری قرار دیا۔‬
‫ح قد ٌ‬ ‫ه إ ِل َق ٌ‬
‫ه َوا ِ‬ ‫مققا الل ّق ُ‬ ‫خي ًْرا ل َك ُ ْ‬
‫م‪ .‬إ ِن ّ َ‬ ‫قوُلوا‪ :‬ث ََلث َ ٌ‬
‫ة انت َُهوا َ‬ ‫سل ِهِ وََل ت َ ُ‬‫مُنوا ِبالل ّهِ وَُر ُ‬ ‫َفآ ِ‬
‫َ‬
‫ه وَلد ٌ ۔‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬
‫نل ُ‬ ‫ن ي َكو َ‬ ‫هأ ْ‬ ‫حان َ ُ‬
‫سب ْ َ‬
‫ُ‬
‫ایمان لؤ اللہ اور اس کے رسول پر اور یہ نہ کہو کہ "خدا تین ہیں" باز آ جاؤ‪ ،‬ی قہ تم ہارے‬
‫حق میں بہتر ہے۔ اللہ تو بس ایک ہی خدا ہے۔ وہ بالتر ہے اس سے کہ اس کا کوئی بیٹققا‬
‫ہو۔ )النساء ‪(4:171‬‬
‫َ‬
‫مٍع ل َ ْ‬
‫م‬ ‫جا ِ‬ ‫ه عََلى أ ْ‬
‫مرٍ َ‬ ‫معَ ُ‬ ‫ذا َ‬
‫كاُنوا َ‬ ‫مُنوا ِبالل ّهِ وََر ُ‬
‫سول ِهِ وَإ ِ َ‬ ‫نآ َ‬ ‫ذي َ‬‫ن ال ّ ِ‬‫مُنو َ‬ ‫ما ال ْ ُ‬
‫مؤْ ِ‬ ‫إ ِن ّ َ‬
‫ْ‬
‫ست َأذُِنوهُ ۔‬‫حّتى ي َ ْ‬‫ي َذ ْهَُبوا َ‬
‫مومن تو اصل میں وہی ہیں جو اللہ اور اس کے رسول کو دل سے مققانیں اور جققب وہ‬
‫کسی اجتماعی کام کے سلسلے میں رسول کے ساتھ ہوں تو ان کی اجازت کے بغیر نہ‬
‫جائیں۔ )النور ‪(24:62‬‬
‫اس طریقے سے اللہ تعالی نے یہ ایمان کامل‪ ،‬جس کے سوا کسی اور چیز کققی پیققروی‬
‫نہیں ہو سکتی‪ ،‬اس ایمان کو قرار دیا جو اللہ اور اس کے رسول دونوں پر لیققا جققائے۔‬
‫اگر کوئی شخص اللہ پر ایمان تو لے آئے لیکن اس کے رسول کققو نقہ مققانے تققو اس کقے‬
‫ایمان کو اس وقت تک مکمل قرار نہیں دیا جا سققکتا جققب تققک کقہ وہ اللقہ اور اس کقے‬
‫رسول دونوں پر ایمان نہ لئے۔ اپنی حدیث میں اسی چیز کا امتحان رسول الل قہ صققلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے لیا۔‬
‫مالک بن انس نے ہلل بن اسامہ سے اور انہوں نے عطققا بققن یسققار سقے اور ان ہوں نقے‬
‫عمر بن الحکم سے روایت کی۔ وہ کہتے ہیں‪ :‬میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم‬
‫کے پاس ایک لونڈی کو لے کر گیا۔ میں نے عرض کی‪" ،‬یا رسول اللہ! مجھ پقر لزم ہے‬
‫کہ میں ایک غلم آزاد کرو۔ کیا میں اسے آزاد کر دوں؟" رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالققہ‬
‫وسلم نے اس سے پوچھا‪" ،‬اللہ کہاں ہے؟" وہ بولی‪" ،‬آسمان پر۔" آپ نے پوچ ھا‪" ،‬میققں‬
‫کون ہوں؟" بقولی‪" ،‬آپ اس کقے رسقول ہیققں۔" آپ نقے فرمایقا‪" ،‬اسقے آزاد کققر دو۔"‬
‫)موطا‪ ،‬مسند احمد‪ ،‬نسائی(‬
‫اس روایت میں راوی کا درست نام معاویہ بن الحکم ہے۔ میرا گمققان ہے کقہ جیسققا کقہ‬
‫دوسرے راویوں کی روایتوں سے پتہ چلتا ہے‪ ،‬شاید مالک ان کا نام درست طور پققر یققاد‬
‫نہیں رکھ سکے۔‬
‫اللہ تعالی نے لوگوں پر اپنی وحی اور اپنے رسول کی سنت کی پیروی لزم کی ہے۔‬
‫جیسا کہ اس کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ة‪،‬‬
‫م َ‬ ‫ب َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬ ‫م ال ْك َِتا َ‬ ‫ك‪ ،‬وَي ُعَل ّ ُ‬
‫مهُ ْ‬ ‫م ي َت ُْلو عَل َي ْهِ ْ‬
‫م آَيات ِ َ‬ ‫سوًل ِ‬
‫من ْهُ ْ‬ ‫م َر ُ‬
‫ث ِفيهِ ْ‬
‫َرب َّنا َواب ْعَ ْ‬

‫‪103‬‬
‫كيهم‪ .‬إن َ َ‬
‫م۔‬
‫كي ُ‬ ‫زيُز ال ْ َ‬
‫ح ِ‬ ‫ت ال ْعَ ِ‬
‫ك أن ْ َ‬ ‫وَي َُز ّ ِ ْ ِ ّ‬
‫اے رب! ان لوگوں میں خود انہی کی قوم سے ایک رسول اٹھانا جو انہیں تیققری آیققات‬
‫پڑھ کر سقنائے‪ ،‬انہیقں کتقاب اور حکمقت کقی تعلیقم دے اور )اس کقے ذریعقے( ان کقی‬
‫شخصیت کو پاک کرے۔ تو بڑا ہی مقتدر اور حکمت وال ہے۔ )البقرہ ‪(2:129‬‬
‫َ‬
‫م‬
‫كق ْ‬ ‫م‪ ،‬وَي ُعَل ّ ُ‬
‫م ُ‬ ‫كي ُ‬
‫كق ْ‬ ‫م آَيات ِن َققا‪ ،‬وَي َُز ّ‬ ‫م ي َت ْل ُققو عَل َي ْ ُ‬
‫كق ْ‬ ‫سقوًل ِ‬
‫من ْك ُق ْ‬ ‫م َر ُ‬ ‫سقل َْنا ِفي ُ‬
‫كق ْ‬ ‫مقا أْر َ‬ ‫كَ َ‬
‫ن۔‬ ‫مو َ‬‫كوُنوا ت َعْل َ ُ‬ ‫م تَ ُ‬ ‫ما ل َ ْ‬ ‫ة‪ ،‬وَي ُعَل ّ ُ‬
‫مك ُ ْ‬
‫م َ‬ ‫ب َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬
‫م َ‬ ‫ال ْك َِتا َ‬
‫میں نے تمہارے درمیان خود تمہی میں سے ایک رسول بھیجا جو تمہیں میری آیات پڑھ‬
‫کر سناتا ہے‪ ،‬تمہاری شخصیت کو پاک کرتا ہے اور )اس کے لئے( تمہیں کتاب و حکمت‬
‫کی تعلیم دیتا ہے اور تمہیں وہ کچھ سکھاتا ہے جققو تققم پہلقے نہیققں جققانتے ت ھے۔ )البقققرہ‬
‫‪(2:151‬‬

‫م ي َت ْل ُققوا عَل َي ْهِ ق ْ‬


‫م‬ ‫سهِ ْ‬ ‫ف ِ‬‫ن أ َن ْ ُ‬ ‫سوًل ِ‬
‫م ْ‬ ‫م َر ُ‬‫ث ِفيهِ ْ‬ ‫ن إ ِذ ْ ب َعَ َ‬
‫مِني َ‬‫مؤْ ِ‬‫ه عََلى ال ْ ُ‬ ‫ن الل ّ ُ‬ ‫م ّ‬
‫قد ْ َ‬ ‫لَ َ‬
‫ل‬‫ض قَل ٍ‬ ‫ل ل َفِققي َ‬ ‫ن قَب ْ ُ‬‫م ْ‬ ‫كاُنوا ِ‬ ‫ن َ‬‫ة‪ ،‬وَإ ِ ْ‬
‫م َ‬ ‫ب َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬ ‫م ال ْك َِتا َ‬ ‫م‪ ،‬وَي ُعَل ّ ُ‬
‫مه ُ ْ‬ ‫كيهِ ْ‬‫ه‪ ،‬وَي َُز ّ‬‫آَيات ِ ِ‬
‫ن۔‬
‫مِبي ٍ‬ ‫ُ‬
‫مومنوں پر اللہ کا یہ بڑا ہی احسان ہوا کقہ اس نقے ان میققں ان ہی کققی قققوم سقے ایققک‬
‫رسول کو بھیجا جو انہیں اس کی آیات پڑھ کر سناتے ہیں‪ ،‬ان کی شخصققیت کققو پققاک‬
‫کرتے ہیں اور )اس کے لئے( انہیں کتاب و حکمت کی تعلیققم دیت قے ہیققں جبک قہ اس س قے‬
‫پہلے یہ لوگ کھلی گمراہی میں تھے۔ )ال عمران ‪( 3:164‬‬
‫ُ‬
‫م‪،‬‬ ‫ه‪ ،‬وَي َُز ّ‬
‫كيهِق ْ‬ ‫م ي َت ْل ُققو عَل َي ْهِق ْ‬
‫م آي َققات ِ ِ‬ ‫سققوًل ِ‬
‫من ْهُق ْ‬ ‫ن َر ُ‬‫مّيي ق َ‬‫ث فِققي اْل ّ‬ ‫ذي ب َعَق َ‬ ‫هُقوَ ال ّق ِ‬
‫ن۔‬
‫مِبي ٍ‬ ‫ل ُ‬‫ضَل ٍ‬ ‫في َ‬ ‫ل لَ ِ‬ ‫ن قَب ْ ُ‬‫م ْ‬ ‫ن َ‬
‫كاُنوا ِ‬ ‫ة‪ ،‬وَإ ِ ْ‬
‫م َ‬ ‫ب َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬ ‫م ال ْك َِتا َ‬
‫مه ُ ْ‬‫وَي ُعَل ّ ُ‬
‫وہی ہے جس نے ان امیوں میں انہی میں سے ایک رسول بھیجا جو انہیں اس کی آیات‬
‫پڑھ کر سناتے ہیں‪ ،‬ان کا تزکیہ کرتے ہیں اور )اس کے لئے( انہیں کتققاب و حکمققت کققی‬
‫تعلیم دیتے ہیں اور اس سے پہلے تو یہ لوگ کھلی گمراہی میں تھے۔ )الجمعہ ‪( 62:2‬‬

‫م قةِ ي َعِظ ُك ُق ْ‬
‫م‬ ‫ب َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬ ‫ن ال ْك ِت َققا ِ‬
‫م ْ‬
‫م ِ‬ ‫ما َأنَز َ‬
‫ل عَل َي ْك ُ ْ‬ ‫ة الل ّهِ عَل َي ْك ُ ْ‬
‫م‪ ،‬وَ َ‬ ‫َواذ ْك ُُروا ن ِعْ َ‬
‫م َ‬
‫ب ِهِ ۔‬
‫اللہ کی اس نعمت کو یاد رکھو جو اس نے تم پر کی ہے۔ اس نے جققو کتققاب و حکمققت‬
‫تم پر نازل کی ہے اس کا احترام ملحوظ رکھو۔ )البقرہ ‪(2:231‬‬
‫ل‬ ‫ن ت َعْل َق ُ‬
‫م‪ ،‬وَك َققا َ‬
‫ن فَ ْ‬
‫ضق ُ‬ ‫ما ل َ ْ‬
‫م ت َك ُ ْ‬ ‫ة‪ ،‬وَعَل ّ َ‬
‫م َ‬
‫ك َ‬ ‫ب َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬
‫م َ‬ ‫ك ال ْك َِتا َ‬‫ه عَل َي ْ َ‬
‫ل الل ّ ُ‬ ‫وََأنَز َ‬
‫ما ۔‬
‫ظي ً‬ ‫ك عَ ِ‬ ‫الل ّهِ عَل َي ْ َ‬
‫اللہ نے تم پر کتاب اور حکمت نازل کی ہے اور تمہیں وہ کچھ سقکھایا ہے جقو تقم نہیقں‬
‫جانتے تھے اور اس کا فضل تم پر بہت ہے۔ )النساء ‪(4:113‬‬
‫فققا‬ ‫ن لَ ِ‬
‫طي ً‬ ‫ن الل ّق َ‬
‫ه ك َققا َ‬ ‫ة‪ .‬إ ِ ّ‬
‫مق ِ‬ ‫ت الل ّهِ َوال ْ ِ‬
‫حك ْ َ‬ ‫ن آَيا ِ‬
‫م ْ‬ ‫ما ي ُت َْلى ِفي ب ُُيوت ِك ُ ّ‬
‫ن ِ‬ ‫َواذ ْك ُْر َ‬
‫ن َ‬
‫خِبيًرا ۔‬ ‫َ‬
‫)اے نبی کی ازواج!( یاد رکھو اللہ کی آیات اور حکمت کی باتوں کقو جقو تم ہارے گ ھر‬
‫میں کی جاتی ہے۔ بے شک اللہ لطیف اور باخبر ہے۔ )الحزاب ‪(33:34‬‬
‫اللہ تعالی نے یہاں "کتاب" کا ذکر کیا اور وہ قرآن مجید ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ اس نققے‬
‫"حکمت" کا ذکر کیا ہے۔ قرآن کے ایسے اہل علم‪ ،‬جققن کققی رائے کققو میققں قبققول کرتققا‬
‫ہوں‪ ،‬کو میں نے کہتے سنا ہے کہ حکمت سے مراد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالققہ وسققلم‬
‫کی سنت ہے۔ یہ بات اللہ تعالی کے ارشاد سے ملتی جلتی ہے لیکققن اللقہ ہی ب ہتر جانتققا‬
‫ہے۔‬
‫یہاں قرآن کے بعد حکمت کا ذکر ہوا ہے۔ اللہ تعالی نے لوگوں پر اپنے احسان کا ذکققر‬

‫‪104‬‬
‫کیا کہ اس نے اپنے رسول کے ذریعے انہیں کتاب اور حکمت کی تعلیم دی ہے۔ اللہ تعالی‬
‫ہی بہتر جانتا ہے کہ یہاں حکمت سے مراد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت‬
‫کے علوہ اور کچھ نہیں ہو سکتا ہے۔ سنت کا قرآن مجید سے براہ راست تعلق ہے۔ الل قہ‬
‫تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی اطاعت کو فرض کیا ہے اور لوگققوں‬
‫پر آپ کی اطاعت کو لزم کیا ہے۔ کسی بھی چیز کو فرض قققرار دینققا اس وقققت تققک‬
‫درست نہیں ہے جبکہ اس کی دلیل اللہ کی کتاب یا پھر اس کے رسول صققلی الل قہ علی قہ‬
‫و ٰالہ وسلم کی سنت سے نہ مل جائے۔‬
‫نوٹ‪ :‬امام شافعی کے نقطہ نظر کے مطابق ان آیات میں "کتاب" سے مراد "قرآن" ہے اور "حکمت"‬
‫سے مراد "سنت" ہے۔ یہی نقطہ نظر امت کے اہل علم کی اکثریت کا ہے۔ ایققک متبققادل نقطقہ نظققر یقہ‬
‫پیش کیا گیا ہے کہ "کتاب" سے مراد اللہ تعالی کے قوانین یعنی شریعت ہے اور "حکمققت" س قے مققراد‬
‫ایمانیات اور اخلقیات ہیں۔ اس نقطہ نظر کقے مطقابق ققرآن اور حقدیث دونقوں ہی میقں کتقاب اور‬
‫حکمت ملیں گی۔ اس کی دلیل یہ بیان کی گئی ہے کہ قرآن مجید میں تورات کو "کتاب" قرار دیا گیا‬
‫ہے کیونکہ اس کا غالب حصہ شریعت اور قوانین پر مشتمل ہے اور انجیل کو "حکمت" قرار دیا گیا ہے‬
‫جس کا غالب حصہ ایمان و اخلق کی دعوت پر مبنی ہے۔‬

‫جیسا کہ ہم پہلے ہی بیان کر چکے ہیں کہ اللہ تعالی نے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالققہ‬
‫وسلم پر ایمان لنا‪ ،‬خود اللہ پر ایمان لنے کے ساتھ ہی ضروری قققرار دیققا ہے۔ رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت اللہ تعالی کی کتاب میں جققو بیققان ہوا ہے‪ ،‬اس‬
‫کی وضاحت کرتی ہے۔ اس کے ان احکامات کو بیان کرتی ہے جو پوری نسل انسققانیت‬
‫کے لئے عام ہیں یا کسی مخصوص گروہ یا فرد کے ساتھ خقاص ہیققں۔ سققنت میققں بیققان‬
‫کردہ حکمت کا براہ راست تعلق اللہ تعالی کی کتاب سے ہے لیکن اس کققا درج قہ کتققاب‬
‫اللہ کے بعد ہے۔ یہ خصوصیت اللہ تعالی کے رسول کے سوا کسی اور حاصل نہیں ہے۔‬
‫اللہ کی اطاعت کی ساتھ رسققول الل قہ کققی اطققاعت ب ھی فققرض ہے اور اس کققا حکققم‬
‫علیحدہ بھی دیا گیا ہے‬
‫اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫ذا قَضقى الّلقه ورسقول ُ َ‬
‫ن ل َُهق ْ‬
‫م‬ ‫ن يَ ُ‬
‫كقو َ‬ ‫مقًرا أ ْ‬ ‫هأ ْ‬‫ُ‬ ‫ُ ََ ُ‬ ‫َ‬ ‫مَنقةٍ إ ِ َ‬
‫مؤْ ِ‬‫ن وََل ُ‬ ‫مقؤْ ِ‬
‫م ٍ‬ ‫ن لِ ُ‬ ‫ما َ‬
‫كا َ‬ ‫وَ َ‬
‫مِبيًنا۔‬ ‫ً‬ ‫َ‬ ‫ض ّ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫ال ْ ِ‬
‫ضلل ُ‬ ‫ل َ‬ ‫قد ْ َ‬
‫ه‪ ،‬ف َ‬
‫سول ُ‬
‫ه وََر ُ‬‫ص الل َ‬ ‫ن ي َعْ ِ‬ ‫م ْ‬
‫م‪ ،‬وَ َ‬
‫مرِهِ ْ‬‫نأ ْ‬ ‫م ْ‬‫خي ََرةُ ِ‬
‫کسی مومن مرد یا عورت کو یہ روا نہیققں ہے کقہ جققب اللقہ اور اس کقا رسقول کسقی‬
‫معاملے کا فیصلہ کر دیں تو پھر اسے اپنے معققاملے میققں خققود فیصققلہ کرن قے کققا اختیققار‬
‫حاصل رہے۔ تو جققو کققوئی اللقہ اور اس کقے رسققول کققی نافرمققانی کققرے تققو وہ کھلققی‬
‫گمراہی میں پڑ گیا۔ )الحزاب ‪(33:36‬‬
‫َ‬ ‫ياأ َيها ال ّذين آمنوا أ َطيعوا الل ّه‪ ،‬وأ َطيعوا الرسو َ ُ‬
‫ن‬ ‫من ْك ُق ْ‬
‫م‪ ،‬فَ قإ ِ ْ‬ ‫ل وَأوِْلي اْل ْ‬
‫م قرِ ِ‬ ‫ّ ُ‬ ‫َ َ ِ ُ‬ ‫ِ ُ‬ ‫ِ َ َ ُ‬ ‫َ َّ‬
‫ْ‬ ‫ّ‬ ‫م ت ُؤْ ِ‬ ‫ُ‬ ‫ّ‬ ‫َ‬ ‫يٍء فَُر ّ‬ ‫م ِفي َ‬
‫ن ِباللهِ َوالي َوْم ِ‬ ‫مُنو َ‬ ‫ن كنت ُ ْ‬
‫ل إِ ْ‬‫سو ِ‬
‫دوهُ إ ِلى اللهِ َوالّر ُ‬ ‫ش ْ‬ ‫ت ََناَزعْت ُ ْ‬
‫ن ت َأ ِْويل۔ً‬
‫س ُ‬ ‫ح َ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫خرِ ذ َل ِك َ‬
‫خي ٌْر وَأ ْ‬ ‫اْل ِ‬
‫اے ایمان والو! اللہ کی اطاعت کرو اور رسول کی اطاعت کرو اور ان لوگوں کی جو‬
‫تم میں سے صاحب امر )حکمران( ہوں۔ پھر اگر کسی معققاملے میققں تم ہارے درمیققان‬
‫اختلف ہو جائے تو اسے اللہ اور اس کے رسول کی طرف لوٹا دو اگر تققم واقعققی الل قہ‬
‫اور اس کے رسول پر ایمان رکھتے ہو۔ یہی صحیح طریقہ ہے اور انجام کے لحققاظ سققے‬
‫بہتر ہے۔ )النساء ‪(4:59‬‬
‫بعض اہل علم نے یہاں "اولو المر" سے مراد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کققی‬
‫افواج کے کمانڈر لئے ہیں۔ ہمیں اسی بات کققی خققبر ملققی ہے۔ ی قہ بققات الل قہ تعققالی کقے‬

‫‪105‬‬
‫دوسرے ارشاد سے مشابہ ہے۔ اس حکم کی وجہ یہ تھی کہ مکہ کے گرد و نواح میں رہنے‬
‫والے عرب لوگ حکمرانی کے مفہوم سے ناآشنا تھے۔ یہ بات ان کے لئے قابل قبققول ہی‬
‫نہ تھی کہ انہیں کسی اور کی اطاعت کرنا پڑے۔ جب انہیں رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم کی اطاعت میں دے دیا گیا تو وہ رسول اللہ صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کقے‬
‫علوہ کسی اور کو حکومت کا اہل نہ سمجھتے تھے۔ انہیں اس بات کا حکم دیا گیا کہ وہ‬
‫ان حاکموں کی اطاعت بھی کریں جنہیں حضور صلی اللہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم ن قے مقققرر‬
‫فرمایا۔‬
‫امراء و حکام کے حقوق و فرائض سے متعلق یہ اطاعت غیر مشروط نہیں ہے بلکہ یہ‬
‫بھی فرما دیا کہ " پھر اگر کسی معاملے میں تمہارے درمیان اختلف ہو جائے تو اس قے الل قہ اور اس‬
‫کے رسول کی طرف لوٹا دو۔" اس کا مطلب یہ ہے کہ لوگققوں اور ان ک قے حکققام جققن کققی‬
‫اطاعت میں وہ لوگ دیے گئے ہیں کے مققابین کسققی معققاملے میققں اگققر اختلف رائے ہو‬
‫جائے تو اس معاملے کو اللہ اور اس کے رسول کی طرف لوٹا دیا جائے۔‬
‫اس کا مطلب یہ ہے کہ اسے اس بات کی طرف لوٹا دیققا جققائے جققو اللقہ اور اس کقے‬
‫رسول نے ارشاد فرمائی ہے اگر تمہارے علم میں یہ ارشاد ہے۔ اگر تمہیں کسی معاملے‬
‫میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے حکم کا علم نہیں ہے تو اس قے حضققور س قے‬
‫پوچھ لو جب بھی تمہاری ملقات آپ سے ہو یا پھر ان سے پقوچھ لقو جقن کقی ملققات‬
‫آپ سے ہوئی ہو۔ یہ ایسا حکم ہے جس کے بارے میں کوئی اختلف نہیں ہے کیققونکہ اللقہ‬
‫تعالی کا ارشاد ہے کہ " کسی مومن مرد یا عورت کو یہ روا نہیں ہے کہ جب اللہ اور اس کا رسول‬
‫کسی معاملے کا فیصلہ کر دیں تو پھر اسے اپنے معاملے میں خود فیصلہ کرنے کا اختیار حاصل رہے۔"‬
‫اگر رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققی وفققات کقے بعققد کسققی مسققئلے میققں‬
‫اختلف رائے ہو جائے تو معاملے کو اللہ تعالی کے بیان کردہ حکم اور اس کے بعققد اسقے‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے بیان کردہ حکم کی طرف لوٹققا دیققا جققائے۔ اگققر‬
‫اس معاملے میں ان دونوں یا کسی ایک میں کوئی واضح حکم نہ مققل سققکے تققو اس قے‬
‫کسی حکم پر قیاس کرتے ہوئے اخذ کیا جائے جیسا کہ میں نے اوپر قبلققے‪ ،‬گوا ہوں ک قے‬
‫اچھے کردار اور فدیے کے جانور کی مماثلت کے احکام میں مثالیں بیان کققی ہیققں۔ اس‬
‫کے علوہ اسی معنی سے مشابہ دیگر آیات میں بھی اللہ تعالی نے یہی حکم دیا ہے۔‬
‫ك مع ال ّقذي َ‬ ‫ومن يطع الل ّه والرسو َ ُ‬
‫ن‬
‫ن الن ّب ِّييق َ‬
‫مق ْ‬ ‫ه عَل َي ْهِق ْ‬
‫م ِ‬ ‫م الل ّق ُ‬‫ن أن ْعَق َ‬ ‫ِ َ‬ ‫ل فَأوْل َئ ِ َ َ َ‬ ‫َ َ ّ ُ‬ ‫َ َ ْ ُ ِ ْ‬
‫قا۔‬
‫ك َرِفي ً‬ ‫َ‬ ‫ُ‬
‫ن أوْلئ ِ َ‬ ‫ن َوال ّ‬
‫س َ‬
‫ح ُ‬
‫ن وَ َ‬‫حي َ‬
‫صال ِ ِ‬ ‫داِء َوال ّ‬
‫شهَ َ‬ ‫قي َ‬ ‫دي ِ‬
‫ص ّ‬
‫َوال ّ‬
‫جو اللہ اور رسول کی اطاعت کرے گا وہ ان لوگوں کے ساتھ ہو گا جن پر اللہ نے انعام‬
‫فرمایا‪ ،‬یعنی انبیاء‪ ،‬صدیقین‪ ،‬شہدا اور صالحین۔ کیسے اچھے ہیں یقہ رفیقق جقو کسقی‬
‫کو میسر آئیں۔ )النساء ‪(4:69‬‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫سول َ ُ‬
‫ه۔‬ ‫طيُعوا الل ّ َ‬
‫ه وََر ُ‬ ‫مُنوا أ ِ‬
‫نآ َ‬ ‫َياأي َّها ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬
‫اے ایمان والو! اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرو۔ )النفال ‪(8:20‬‬
‫اطاعت رسول کے بارے میں اللہ تعالی کے احکامات‬
‫اللہ تبارک و تعالی ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫ه‪ .‬ي َد ُ الل ّهِ فَوْقَ‬
‫ث فَإ ِن ّ َ‬
‫مققا‬ ‫ن ن َك َق َ‬
‫م ْ‬ ‫م فَ َ‬
‫ديهِ ْ‬‫أي ْ ِ‬ ‫ن الل ّ َ‬ ‫ما ي َُباي ُِعو َ‬ ‫ن ي َُباي ُِعون َ َ‬
‫ك إ ِن ّ َ‬ ‫ن ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫إِ ّ‬
‫َ‬ ‫هّ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬
‫ما۔‬ ‫ظي ً‬
‫جًرا عَ ِ‬ ‫فَ َ‬
‫سي ُؤِْتيهِ أ ْ‬ ‫ه الل َ‬
‫عاهَد َ عَلي ْ ُ‬‫ما َ‬ ‫َ‬
‫ن أوْفى ب ِ َ‬ ‫م ْ‬‫ه‪ ،‬وَ َ‬ ‫س ِ‬‫ف ِ‬‫ث عَلى ن َ ْ‬ ‫ي َن ْك ُ‬
‫)اے رسول!( جو لوگ آپ سے بیعت کر رہے تھے وہ درحقیقت اللہ سقے بیعققت کققر ر ہے‬
‫تھے۔ ان کے ہاتھ پر اللہ کا ہاتھ تھا۔ اب جو اس عہد کو توڑے گققا تققو اس کققا وبققال خققود‬

‫‪106‬‬
‫اس پر ہو گا اور جو اس وعدے کو پورا کرے گا جو اس نے اللہ سے کیا تھا تو عنقریققب‬
‫اللہ کو بڑا اجر عطا فرمائے گا۔ )الفتح ‪(48:10‬‬
‫ه۔‬ ‫قد ْ أ َ َ‬
‫طاعَ الل ّ َ‬ ‫ل فَ َ‬
‫سو َ‬
‫ن ي ُط ِعْ الّر ُ‬
‫م ْ‬
‫َ‬
‫جس نے رسول کی اطاعت کی‪ ،‬درحقیقققت اس ن قے الل قہ کققی اطققاعت کققی۔ )النسققاء‬
‫‪(4:80‬‬
‫ان آیات میں اللہ تعالی نے یہ بتا دیا کہ اس کے رسول کی بیعت دراصل اسی کی بیعت‬
‫ہے اور اس کے رسول کی اطاعت دراصل اسی کی اطاعت ہے۔ مزید ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫دوا فِققي‬ ‫م َل ي َ ِ‬
‫جق ُ‬ ‫م‪ ،‬ث ُق ّ‬
‫جَر ب َي ْن َهُق ْ‬
‫شق َ‬‫مققا َ‬‫ك ِفي َ‬ ‫مققو َ‬ ‫حك ّ ُ‬
‫حت ّققى ي ُ َ‬
‫ن َ‬ ‫ك َل ي ُؤْ ِ‬
‫مُنو َ‬ ‫فََل وََرب ّ َ‬
‫ما ۔‬
‫سِلي ً‬‫موا ت َ ْ‬‫سل ّ ُ‬
‫ت‪ ،‬وَي ُ َ‬ ‫ما قَ َ‬
‫ضي ْ َ‬ ‫م ّ‬
‫جا ِ‬ ‫حَر ً‬ ‫م َ‬ ‫سهِ ْ‬‫ف ِ‬‫َأن ُ‬
‫تمہارے رب کی قسم یہ لوگ کبھی مومن نہیں ہو سکتے جب تک اپنے باہمی اختلفققات‬
‫میں تمہیں فیصلہ کرنے وال نہ مان لیں۔ پھر جو کچھ تم فیصلہ کرو اس پققر اپن قے دلققوں‬
‫میں بھی کوئی تنگی محسوس نہ کریں بلکہ سر بسر تسلیم کر لیں۔ )النساء ‪(4:65‬‬
‫اس آیت سے متعلق ہم تک یہ بات پہنچی ہے کہ ایک زرعی معاملے میں ایک شققخص کققا‬
‫سیدنا زبیر رضی اللہ عنہ سے جھگڑا ہو گیا۔ جب اس کا مقققدمہ رسققول اللقہ صققلی اللقہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کے پاس آیا تو آپ نے سیدنا زبیر رضی اللہ عنہ کے حققق میققں فیصققلہ دے‬
‫دیا۔ یہ فیصلہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی حدیث میں سے تھا نہ کہ قرآن کققا‬
‫کوئی حکم تھا۔ قرآن نے وہی بات بیان کی جققو میققں نقے بیققان کققی۔ اگققر قققرآن کققوئی‬
‫فیصلہ دے دیتا تو یہ کتاب اللہ میں واضح طور پر درج ہوتا۔ اگر لوگ کتاب اللہ میں درج‬
‫کسی حکم کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیتے تو وہ اس پر ایمان لنے والوں میں سققے‬
‫نہ رہتے کیونکہ اللہ تعالی کے نازل کردہ حکم کو نہ ماننے وال مسلمان نہیں ہو سکتا۔ الل قہ‬
‫تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ن‬ ‫ه ال ّق ِ‬
‫ذي َ‬ ‫م الل ّق ُ‬ ‫ضققا‪ .‬قَقد ْ ي َعْل َق ُ‬‫م ب َعْ ً‬‫ضك ُ ْ‬ ‫م ك َد ُ َ‬
‫عاِء ب َعْ ِ‬ ‫ل ب َي ْن َك ُ ْ‬
‫سو ِ‬
‫عاَء الّر ُ‬ ‫جعَُلوا د ُ َ‬ ‫َل ت َ ْ‬
‫ة أوَ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫م فِت ْن َ ٌ ْ‬‫صيب َهُ ْ‬
‫ن تُ ِ‬ ‫مرِهِ أ ْ‬ ‫نأ ْ‬ ‫ن عَ ْ‬ ‫فو َ‬ ‫خال ِ ُ‬
‫ن يُ َ‬
‫ذي َ‬‫حذ َْر ال ّ ِ‬‫ذا ‪ ،‬فَل ْي َ ْ‬
‫وا ً‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫م لِ َ‬ ‫ن ِ‬‫سل ُّلو َ‬ ‫ي َت َ َ‬
‫م۔‬ ‫َ‬ ‫م عَ َ‬
‫ب أِلي ٌ‬ ‫ذا ٌ‬ ‫صيب َهُ ْ‬ ‫يُ ِ‬
‫مسلمانو! اپنے درمیان رسول کے بلنے کو ایک دوسرے کا سا بلنا نہ سمجھ لو‪ ،‬اللہ تم‬
‫میں سے ایسے لوگوں کو جانتا ہے جو ایک دوسرے کققی آڑ میققں چپکقے سقے غققائب ہو‬
‫جاتے ہیں۔ رسول کے حکم کی خلف ورزی کرنے والققوں کققو ڈرنققا چققاہیے ک قہ وہ کسققی‬
‫فتنے کا شکار نہ ہو جائیں یا ان پر دردناک عذاب نہ آ جائے۔ )النور ‪(24:63‬‬
‫ن‬‫ن‪ .‬وَإ ِ ْ‬ ‫ضققو َ‬ ‫معْرِ ُ‬ ‫م ُ‬‫من ْهُق ْ‬ ‫ريققٌ ِ‬ ‫ِ‬ ‫ذا فَ‬‫م إِ َ‬ ‫م ب َي ْن َهُق ْ‬ ‫حك ُ َ‬ ‫سول ِهِ ل ِي َ ْ‬ ‫عوا إ َِلى الل ّهِ وََر ُ‬ ‫ذا د ُ ُ‬ ‫وَإ ِ َ‬
‫َ‬ ‫َ‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ْ‬ ‫ْ‬ ‫َ‬
‫ن‬ ‫خاُفو َ‬ ‫م يَ َ‬ ‫م اْرَتاُبوا أ ْ‬ ‫ضأ ْ‬ ‫مَر ٌ‬ ‫م َ‬ ‫ن‪ .‬أِفي قُلوب ِهِ ْ‬ ‫عِني َ‬ ‫مذ ْ ِ‬ ‫حقّ ي َأُتوا إ ِلي ْهِ ُ‬ ‫م ال َ‬ ‫ن لهُ ْ‬ ‫ي َك ُ ْ‬
‫ُ‬ ‫َ‬
‫ل‬ ‫ن قَوْ َ‬ ‫ما َ‬
‫كا َ‬ ‫مون۔ إ ِن ّ َ‬ ‫م الظ ّققال ِ ُ‬ ‫ك هُ ق ْ‬ ‫ل أوْل َئ ِ َ‬ ‫ه؟ ب َ ْ‬ ‫سول ُ ُ‬ ‫م وََر ُ‬ ‫ه عَل َي ْهِ ْ‬ ‫ف الل ّ ُ‬ ‫حي َ‬ ‫ن يَ ِ‬ ‫أ ْ‬
‫ذا دعُققوا إل َققى الل ّقه ورسققول ِه ل ِيحك ُقم بينهق َ‬
‫معَْنا‬ ‫قول ُققوا‪َ :‬‬
‫سق ِ‬ ‫ن يَ ُ‬ ‫مأ ْ‬ ‫َ ََُْ ْ‬ ‫ِ َ ْ‬ ‫ِ ََ ُ‬ ‫ِ‬ ‫ن إِ َ ُ‬ ‫مِني َ‬‫مقؤْ ِ‬ ‫ال ْ ُ‬
‫ش الل ّ َ‬
‫ه‬ ‫خ َ‬ ‫ه‪ ،‬وَي َ ْ‬ ‫سول َ ُ‬ ‫ه وََر ُ‬ ‫ن ي ُط ِعْ الل ّ َ‬ ‫م ْ‬ ‫وَ َ‬ ‫ن۔‬‫حققو َ‬ ‫فل ِ ُ‬
‫م ْ‬‫م ال ْ ُ‬ ‫ك هُ ق ْ‬ ‫وَأ َط َعَْنا‪ ،‬وَ أوْل َئ ِ َ‬
‫ُ‬
‫ن۔‬‫فائ ُِزو َ‬ ‫م ال ْ َ‬‫ك هُ ْ‬ ‫ه‪ ،‬فَأ ُوْل َئ ِ َ‬ ‫قي ِ‬ ‫وَي َت ّ ِ‬
‫جب انہیں اللہ اور اس کے رسول کی طرف بلیا جاتا ہے تاکہ رسول ان ک قے آپققس ک قے‬
‫مقدمے کا فیصلہ کر دیں تو ان میں سے ایک فریق کترا جاتا ہے جبکہ اگر فیصلہ ان کے‬
‫حق میں ہونے وال ہو تو بڑے فرمانبردار بن کققر آ جققاتے ہیققں۔ کیققا ان میققں دلققوں میققں‬
‫کوئی بیماری ہے یا یہ شک میں پڑے ہوئے ہیں یا ان کو یہ خقوف ہے کقہ اللقہ اور اس کقا‬
‫رسول ان پر ظلم کریں گے۔ اصل بات تو یہ ہے کہ ظققالم ی ہی لققوگ ہیققں۔ ایمققان لن قے‬
‫والوں کا کام یہ ہے کہ جب انہیں اللہ اور اس کے رسول کقی طقرف بلیقا جاتقا ہے تقاکہ‬
‫رسول ان کے مقدمے کا فیصلہ کریں تو وہ کہتے ہیں‪ " ،‬ہم نقے سققنا اور اطققاعت کققی۔"‬

‫‪107‬‬
‫ایسے ہی لوگ فلح پانے والے ہیں اور کامیاب وہی ہیں جو اللہ اور اس کے رسول کققی‬
‫اطاعت کریں‪ ،‬اللہ سے ڈریں اور اس کی نافرمانی سے بچیں۔ )النور ‪(52-24:48‬‬
‫اس آیت میں اللہ تعالی نے لوگوں کو بتا دیا کہ اگر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‬
‫کسی معاملے میں فیصلہ کرنے کے لئے بلئیں تو یہ اللہ ک قے حکققم کققی طققرف بلنققا ہے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ان کے درمیان اللقہ تعققالی کققی طققرف سقے فیصققلہ‬
‫فرمانے کے لئے موجود ہیں۔ جب یہ لوگ حضور کے کسی فیصلے کے سامنے سر تسلیم‬
‫خم کرتے ہیں تو وہ دراصل اللہ کے فیصلے کے سامنے ہی سر جھکا رہے ہوتے ہیں۔‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کا فیصلہ اللہ کا فیصلہ ہے۔ اس فیصلے کو ماننا ہم پر‬
‫فرض ہے۔ اللہ تعالی نے اپنے کامل علم سے حضور صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققو دیققن‬
‫پہنچانے کے لئے اتھارٹی مقرر کیا ہے اور آپ کو اپنی توفیق سے ہر قسم ک قے گنققاہ س قے‬
‫معصوم فرمایا ہے۔ آپ اللہ تعالی کے احکامات کو براہ راست حاصل کرتے ہیں اور اس‬
‫کے حکم کی پیروی کرتے ہیں۔ اللہ تعالی نے تمام مخلقوق پقر اپنقے رسققول کقی پیقروی‬
‫کرنے کی ذمہ داری عائد کی ہے اور انہیں یہ بتایا ہے کہ رسول کی اطاعت الل قہ ہی کققی‬
‫اطاعت ہے۔ اس نے انہیں یہ بھی بتایا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کققی ی قہ‬
‫ذمہ داری ہے کہ آپ اللہ کی اطاعت کریں۔‬
‫اللہ تعالی کی وضاحت کہ اس کی وحی کی پیروی اس کے رسققول پققر فققرض ہے‪ ،‬اللقہ‬
‫تعالی کی گواہی کہ اس کے رسول اسققی ک قے احکققام کققی پیققروی کرت قے ہیققں اور و ہی‬
‫ہدایت پر ہے جو آپ کی پیروی کرے‬
‫اللہ تبارک و تعالی اپنے نبی کے بارے میں ارشاد فرماتا ہے‪:‬‬
‫مققا‬
‫ن عَِلي ً‬ ‫ن الل ّق َ‬
‫ه ك َققا َ‬ ‫ن‪ .‬إ ِ ّ‬
‫قي َ‬ ‫ن َوال ْ ُ‬
‫من َققافِ ِ‬ ‫ري َ‬ ‫ه وََل ت ُط ِعْ ال ْك َققافِ ِ‬
‫ق الل ّ َ‬ ‫ي ات ّ ِ‬
‫یا اي َّها الن ّب ِ ّ‬
‫خِبيًرا ۔‬‫ن َ‬‫ملو َ‬ ‫ُ‬ ‫ما ت َعْ َ‬‫ن بِ َ‬ ‫َ‬
‫ه كا َ‬ ‫ّ‬
‫ن الل َ‬ ‫َ‬
‫ن َرب ّك‪ .‬إ ِ ّ‬ ‫م ْ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫حى إ ِلي ْك ِ‬ ‫ما ُيو َ‬ ‫ما۔َوات ّب ِعْ َ‬
‫كي ً‬‫ح ِ‬
‫َ‬
‫اے نبی! اللہ سے )حسب سابق( ڈرتقے رہیقے اور کفققار و منققافقین کققی بققات نقہ مققانیے۔‬
‫حقیقت میں علیم و حکیم تو اللہ ہی ہے۔ اسقی بققات کققی پیقروی کیجیقے جقو آپ کققی‬
‫طرف آپ کے رب کی طرف سے وحی کی جا رہی ہے۔ اللہ ہر اس بات سے بققاخبر ہے‬
‫جو تم لوگ کرتے ہو۔ )الحزاب ‪(2-33:1‬‬
‫َ‬ ‫ما ُأو ِ‬
‫ن۔‬
‫كي َ‬
‫شرِ ِ‬ ‫ن ال ْ ُ‬
‫م ْ‬ ‫ض عَ ْ‬ ‫ه إ ِّل هُ َ‬
‫و‪ ،‬وَأعْرِ ْ‬ ‫ك‪َ ،‬ل إ ِل َ َ‬
‫ن َرب ّ َ‬
‫م ْ‬ ‫ي إ ِل َي ْ َ‬
‫ك ِ‬ ‫ح َ‬ ‫ات ّب ِعْ َ‬
‫اس وحی کی پیروی کیجیے جو آپ کی طرف آپ کے رب کی طرف سے ہے۔ اس کے‬
‫سوا کوئی معبود نہیں اور مشرکین سے منہ پھیر لیجیے۔ )النعام ‪(6:106‬‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫ن۔‬ ‫ن َل ي َعْل َ ُ‬
‫مو َ‬ ‫واءَ ال ّ ِ‬
‫ذي َ‬ ‫مرِ َفات ّب ِعَْها‪ ،‬وََل ت َت ّب ِعْ أهْ َ‬
‫ن اْل ْ‬
‫م ْ‬
‫ريعَةٍ ِ‬ ‫ك عََلى َ‬
‫ش ِ‬ ‫جعَل َْنا َ‬ ‫ثُ ّ‬
‫م َ‬
‫ہم نے آپ کو دین کے معاملے میں ایک صاف شاہراہ )شققریعت( پققر قققائم کیققا ہہہے۔ آپ‬
‫اس کی پیروی کیجیے اور ان لوگوں کی خواہشات کی پیروی نہ کیجیے جو علققم نہیققں‬
‫رکھتے۔ )الجاثیہ ‪(45:18‬‬
‫َ اللہ تعالی نے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو یہ بتا دیا کہ اس نے آپ پققر یقہ احسققان‬
‫کیا ہے کہ وہ آپ کو اپنی مخلوق کے شر سے بچائے گا چنانچہ اس کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫مققا ب َل ّغْق َ‬
‫ت‬ ‫ل‪ ،‬فَ َ‬
‫فع َ ق ْ‬ ‫ن ل َق ْ‬
‫م تَ ْ‬ ‫ن َرب ّق َ‬
‫ك‪ ،‬وَإ ِ ْ‬ ‫مق ْ‬
‫ك ِ‬ ‫مققا ُأنقزِ َ‬
‫ل إ ِل َي ْق َ‬ ‫ل ب َل ّغْ َ‬
‫سو ُ‬ ‫َ‬
‫َياأي َّها الّر ُ‬
‫س۔‬
‫ن الّنا ِ‬ ‫م ْ‬
‫ك ِ‬ ‫م َ‬ ‫ص ُ‬
‫ه ي َعْ ِ‬ ‫ه‪َ ،‬والل ّ ُ‬
‫سال َت َ ُ‬ ‫رِ َ‬
‫اے رسول! آپ کے رب کی جانب سے جو آپ کی طرف نازل ہوا‪ ،‬اسے پہنچققائیے‪ ،‬اگققر‬
‫آپ ایسا نہیں کریں گے تو آپ نے رسالت کا حق ادا نہیں کیا۔ اللہ آپ کو ان لوگوں کے‬
‫شر سے بچانے وال ہے۔ )المائدہ ‪(5:67‬‬

‫‪108‬‬
‫َ اللہ تعالی نے اس بات کی گواہی دی ہے کہ اس نے جو وحی رسول اللہ صلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم پر نازل کی ہے اس پر آپ مضبوطی سے ایمان ل قے آئیققں کیققونکہ وہ آپ ک قے‬
‫لئے اور آپ کی پیروی کرنے والوں کے لئے ہدایت ہے۔‬
‫ك روحا م َ‬ ‫وك َذ َل ِ َ َ‬
‫ن‪،‬‬
‫مققا ُ‬ ‫ب وََل ا ْ ِ‬
‫لي َ‬ ‫مققا ال ْك ِت َققا ُ‬
‫ت ت َد ِْري‪َ :‬‬‫ما ك ُن ْ َ‬‫مرَِنا َ‬
‫نأ ْ‬ ‫حي َْنا إ ِل َي ْ َ ُ ً ِ ْ‬
‫ك أو ْ َ‬ ‫َ‬
‫ط‬
‫صقَرا ٍ‬ ‫َ‬
‫دي إ ِلقى ِ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫عَبادَِنا‪ ،‬وَإ ِن ّك لت َْهق ِ‬‫ن ِ‬‫م ْ‬ ‫ن نَ َ‬
‫شاُء ِ‬ ‫م ْ‬
‫دي ب ِهِ َ‬ ‫ْ‬
‫جعَلَناهُ ُنوًرا ن َهْ ِ‬ ‫ن َ‬ ‫َ‬
‫وَلك ِ ْ‬
‫قيم ٍ ۔‬
‫ست َ ِ‬‫م ْ‬ ‫ُ‬
‫ہم نے اپنے حکم سے ایک روح آپ کی طرف وحی کی ہے۔ )اس وحققی س قے قبققل( آپ‬
‫کو یہ علم نہ تھا کہ کتاب کیا ہوتی ہے اور ایمان کیا ہوتققا ہے۔ اس روح کققو ہم نقے ایققک‬
‫روشنی بنا دیا جس کے ذریعے ہم اپنے بندوں میں سے جس قے چققاہتے ہیققں ہدایت دیت قے‬
‫ہیں‪ ،‬یقینا آپ سیدھے راستے کی طرف راہنمائی کر رہے ہیں۔ )الشوری ‪(42:52‬‬
‫ضقّلو َ‬ ‫ة منهق َ‬ ‫ت َ‬
‫مقا‬‫ك‪ ،‬وَ َ‬ ‫ن يُ ِ‬‫مأ ْ‬ ‫فق ٌ ِ ْ ُ ْ‬ ‫طائ ِ َ‬ ‫مق ْ‬‫ه ل َهَ ّ‬‫مُتق ُ‬ ‫ح َ‬
‫ك‪ ،‬وََر ْ‬ ‫ل الّلقهِ عَل َْيق َ‬ ‫وََلقوَْل فَ ْ‬
‫ضق ُ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫ب‬‫ك ال ْك َِتقا َ‬
‫ه عَل َْيق َ‬
‫ل الّلق ُ‬‫يٍء‪ ،‬وَأنقَز َ‬ ‫شق ْ‬‫ن َ‬ ‫مق ْ‬ ‫ك ِ‬ ‫ضقّرون َ َ‬ ‫ما ي َ ُ‬
‫م‪ ،‬وَ َ‬ ‫سهُ ْ‬
‫ف َ‬ ‫ن إ ِّل أن ُ‬‫ضّلو َ‬ ‫يُ ِ‬
‫ما۔‬
‫ظي ً‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫ّ‬
‫ل اللهِ عَلي ْك عَ ِ‬ ‫ض ُ‬ ‫ن فَ ْ‬ ‫َ‬
‫م‪ ،‬وَكا َ‬ ‫َ‬
‫ن ت َعْل ُ‬ ‫ُ‬
‫م ت َك ْ‬ ‫َ‬
‫ما ل ْ‬ ‫مك َ‬‫َ‬ ‫ّ‬
‫ة‪ ،‬وَعَل َ‬ ‫م َ‬ ‫ْ‬
‫حك َ‬ ‫ْ‬
‫َوال ِ‬
‫اگر اللہ کا فضل اور اس کی رحمت آپ پر نہ ہوتی تو ان کے ایک گروہ نے تو یہ فیصققلہ‬
‫کر ہی لیا تھا کہ وہ آپ کو گمراہ کر دیں۔ وہ اپنقے سققوا کسققی اور کققو گمققراہ نہیققں کققر‬
‫سکتے اور نہ ہی آپ کو کسی چیز سے نقصان پہنچا سکتے ہیں۔ اللہ نے آپ کققی جققانب‬
‫کتاب اور حکمت نازل کی ہے اور آپ کو وہ کچھ سکھایا ہے جو آپ نہیں جانتے تھے اور‬
‫آپ پر اللہ کا بہت فضل ہے۔ )النساء ‪(4:113‬‬
‫َ اللہ تعالی نے یہاں یہ واضح کر دیا ہے کہ اس نے اپنے نبی پر اپنے دین کی اتباع کققو لزم‬
‫کیا ہے۔ آپ کے لئے یہ بھی ضروری ہے کہ اس ہدایت کو دوسروں تک پہنچققانے کقے سققاتھ‬
‫ساتھ اس کی گواہی آپ خود اپنی ذات کے لئے بھی دیں۔ ہم بھی اللہ کا تقققرب حاصققل‬
‫کرنے کے لئے اس پر ایمان ل کر اور اس کا توسل حاصل کرن قے ک قے لئے اس ک قے کلم‬
‫کی تصدیق کر کے اسی بات کی گواہی دیتے ہیں۔‬
‫عبدالعزیز نے عمرو بن ابی عمرو جو کہ مطلب کے آزاد کردہ غلم ت ھے اور ان ہوں ن قے‬
‫مطلب بن حنطب سے روایت کی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم نقے ارشققاد‬
‫فرمایا۔ "اللہ تعالی نے مجھے جس چیز کو حکم تم تک پہنچانے کا حکم دیا میں نے اس‬
‫میں کوئی بات نہیں چھوڑی اور تمہیں اس کا پورا پورا حکم پہنچا دیا۔ جس چیققز سقے‬
‫اللہ نے تمہیں روکنے کا حکم دیا‪ ،‬میں نے اس میققں سقے کققوئی بققات نہیققں چ ھوڑی اور‬
‫تمہیں اس سے روک دیا۔ )مسند شافعی(‬
‫اللہ تعالی نے اپنے لمحدود علم اور ناقابل تسیخ فیصلے کے ذریعے ہمیں یہ بتا دیا کہ جققو‬
‫لوگ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو گمراہ کرن قے کققی کوشققش کققر ر ہے ت ھے‪ ،‬الل قہ‬
‫تعالی نے انہیں اس سے روک دیا اور آپ کو یہ بتا دیا کہ وہ آپ کو کوئی نقصان نہ پہنچققا‬
‫سکیں گے۔‬
‫اللہ تعالی نے اس بات کی گواہی دے دی کہ رسققول اللقہ صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم‬
‫صراط مستقیم کی طرف راہنمائی فرماتے ہیں جو ک قہ الل قہ کققا راسققتہ ہے۔ آپ اس کققا‬
‫پیغام پہنچاتے ہیں‪ ،‬اس کے احکام کی پیروی کرتے ہیں‪ ،‬اور جیسا کہ میں نے بیان کیا کہ‬
‫اللہ کی اطاعت حضور پر فرض ہے۔ یہ سب باتیں اوپر مذکور آیات میں بیان ہوئی ہیں۔‬
‫اللہ تعالی نے اپنی مخلوق پر یہ حجت پوری کر دی ہے کہ وہ رسول اللقہ صقلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم کے حکم کو تسلیم کریں اور آپ کی پیروی کریں۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جو حکم بھی دیا ہے‪ ،‬اگرچہ وہ کتاب اللہ میققں‬
‫لکھا ہوا نہ بھی ہو‪ ،‬وہ تب بھی اللہ تعالی کا حکم ہی ہے۔ اسققی بققات کققو اللقہ تعققالی نقے‬

‫‪109‬‬
‫قيم ٍ" یعنی "آپ تققو سققیدھے‬
‫ست َ ِ‬
‫م ْ‬
‫ط ُ‬ ‫دي إ َِلى ِ‬
‫صَرا ٍ‬ ‫ك ل َت َهْ ِ‬
‫قرآن مجید میں یوں بیان کیا کہ َ"إ ِن ّ َ‬
‫راستے کی طرف راہنمققائی کرن قے وال قے ہیققں۔" حضور صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم نقے ایسقے‬
‫معاملت میں بھی سنت قائم کی جن میں کتاب اللہ میں کققوئی حکققم موجققود ت ھا اور‬
‫ایسے معاملت میں بھی راہنمائی فرمائی جن میں اس کتاب میں کوئی واضح حکم یا‬
‫نص موجود ہے۔‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جو سنت قائم کی‪ ،‬اللہ تعالی نے ہم پققر لزم کققر‬
‫دیا ہے کہ ہم اس کی اتباع کریں۔ اس سنت کی پیروی ہی میققں الل قہ کققی اطققاعت ہے۔‬
‫اس اتباع سے انکار کرنا ایسا گناہ ہے جس پر کوئی مخلوق بھی کوئی عذر پیققش نہیققں‬
‫کر سکتی۔ اس سنت کی پیروی سے نکلنے کا کوئی راستہ اللہ تعالی ن قے نہیققں چ ھوڑا۔‬
‫یہی بات میں بیان کر چکا ہوں اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم ن قے ب ھی ی ہی‬
‫ارشاد فرمایا ہے۔‬
‫سفیان کو سالم ابوالنضر‪ ،‬جو کہ عمر بن عبیداللہ کے ّآزاد کردہ غلم تھے‪ ،‬ن قے بتایققا ک قہ‬
‫عبیداللہ بن ابی رافع نے اپنے والد سے سنا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالقہ وسققلم نقے‬
‫ارشاد فرمایا‪ :‬میں تم میں سے کسی کو نہ پاؤں کہ وہ اپنے پلنگ پر تکیہ لگائے بیٹھا ہو‬
‫اور اس کے سامنے میرے احکام میں سے کوئی حکم پیش کیا جائے‪ ،‬جس میں کسققی‬
‫چیز پر عمل کرنے یا کسی چیز سے رکنے کا حکم دیا گیا ہو‪ ،‬تو وہ کہے‪" ،‬مجھے معلوم‬
‫نہیں‪ ،‬اللہ کی کتاب میں تو اس کا کوئی ہمیں نہیں مل جققس کققی ہم پیققروی کریققں۔"‬
‫)ترمذی‪ ،‬ابوداؤد‪ ،‬ابن ماجہ(‬
‫سفیان کہتے ہیں کہ یہ حدیث محمد بن المنکدر نے نبی صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسقلم سقے‬
‫مرسل ً بھی روایت کی ہے۔ "اریکہ" کا معنی پلنگ ہوتا ہے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کی دو اقسام ہیں۔ ان میں س قے ایققک‬
‫تو یہ ہے کہ اللہ کی کتاب میں کوئی واضح حکم موجود تھا اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم نے اس کی پیروی فرمائی۔ دوسرا یہ ہے کہ قققرآن میققں کققوئی حکققم ت ھا اور‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس کققی وضققاحت فرمققائی کقہ اس حکققم سقے اللقہ‬
‫تعالی کی مراد کیا ہے؟ آپ نے یہ واضح فرما دیا کہ یہ حکم تمام انسققانوں کقے لئے عققام‬
‫ہے یا کسی مخصوص گروہ کے ساتھ خاص۔ اس حکم میں بندوں سے کیا مطالبہ کیا گیا‬
‫ہے؟ ان دونوں صورتوں میں حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اللہ کی کتاب کققی پیققروی‬
‫ہی کر رہے ہوتے ہیں۔‬
‫میں کسی ایسے عالم کو نہیں جانتا جو اس بات سے اختلف رکھتا ہو کہ نققبی صققلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت کی تین اقسام ہیں۔ ان میں سے دو اقسام پر تو سب کا‬
‫اتفاق رائے ہے۔ ان دو اقسام میں بعض امور پر اتفاق ہے اور بعض پر اختلف۔‬
‫• پہلی قسم یہ ہے کہ اللہ تعالی نے اپنی کتاب میں کوئی واضح حکم دیا تو رسول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس حکم کققی وضققاحت فرمققا دی کقہ اس حکققم‬
‫سے کیا مراد ہے؟‬
‫• دوسری قسم یہ ہے کہ اللہ تعالی نے اپنی کتاب میں کوئی حکم بیان فرمایققا تققو‬
‫آپ نے اللہ کی جانب سے ہی وضاحت فرمائی کہ اس حکم کا معنی کیققا ہے۔ ان‬
‫دو اقسام میں تو کوئی اختلف موجود نہیں۔‬
‫• تیسری قسم یہ ہے کہ اللہ تعالی کی کتاب میں کققوئی نققص موجققود نقہ ت ھی اور‬
‫اس سے متعلق رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت جاری فرمائی۔‬
‫اہل علم میں سے بعض کا نقطہ نظر یہ ہے کہ اللہ تعققالی ن قے اپن قے لمحققدود علققم اور‬

‫‪110‬‬
‫اپنی مرضی سے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو اس بات کققی ات ھارٹی دی ہے ک قہ‬
‫جہاں اللہ کی کتاب میں کوئی نص موجود نہ ہو وہاں آپ سنت جاری فرمائیں۔‬
‫اہل علم کے دوسرے گروہ کا نقطہ نظر یہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم‬
‫نے کوئی ایسی سنت جاری نہیں فرمائی جس کی اصل کتاب اللہ میقں موجقود نقہ ہو۔‬
‫اس کی مثال یہ ہے کہ قرآن مجید میں نماز کا حکم دیققا گیققا اور سققنت میققں نمققاز کققی‬
‫تعداد اور اس پر عمل کے طریقے کی وضققاحت کققی گئی۔ اس کققی اصققل قققرآن میققں‬
‫مذکور ہے۔ اسی طرح خرید و فروخت کے معاملت میں سنت قائم کی گئی جس کی‬
‫َ‬ ‫ْ‬
‫ل " یعنقی "آپققس میققں اپن قے امققوال‬
‫طق ِ‬‫م ِبال َْبا ِ‬‫كق ْ‬ ‫وال َك ُ ْ‬
‫م ب َي ْن َ ُ‬ ‫م َ‬‫اصل قرآن میں ہے کہ "َل ت َأك ُُلوا أ ْ‬
‫َ‬
‫رَبا " یعنی "اللہ نقے تجققارت کققو حلل‬‫م ال ّ‬
‫حّر َ‬ ‫ه ال ْب َي ْعَ وَ َ‬
‫ل الل ّ ُ‬ ‫ح ّ‬ ‫باطل طریقے سے نہ کھاؤ۔" اور "وَأ َ‬
‫قرار دیا ہے اور سود کو حرام۔" جو کچھ حلل یا حرام تھا‪ ،‬حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم‬
‫نے اسے اللہ تعالی ہی کی طرف سے اسی طرح واضح فرما دیا جیسا کقہ آپ نقے نمقاز‬
‫کی وضاحت فرمائی۔‬
‫ا ہل علم ک ے تیسرے گرو ہ کا نقط ہ نظر ی ہ ہے ک ہ رسول اللص ہ صققلی الل قہ علی قہ‬
‫و ٰالہ وسلم کو اللہ تعالی کی جانب سے حکم دیا جاتا تھا آپ کی سنت کققی توثیققق کققر‬
‫دیتا تھا۔ چوتھے گروہ کا نقطہ نظر یہ ہے کہ سنت اللہ کی حکمت ہے جققس کققا القققاء اللقہ‬
‫کی جانب سے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کو کیا گیا ہے۔‬
‫عبدالعزیز نے عمرو بن ابی عمرو سے روایت کی اور انہوں نے مطلب سے ک قہ رسققول‬
‫اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" :‬روح المین نے میرے دل میں یہ بات ڈالی ہے‬
‫کہ کوئی شخص بھی اس وقت تک نہ مرے گا جب تک اس کے حصے کققا رزق اس تققک‬
‫نہ پہنچ جائے۔ اس لئے رزق طلب کرنے میں میانہ روی سے کام لو۔" )ابن مققاجہ‪ ،‬مسققند‬
‫شافعی(‬
‫جو بات حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے دل میں ڈال دی گئی وہ وہی حکمت ہے‬
‫جس کا ذکر اللہ تعالی نے قرآن میققں کیققا ہے۔ اللقہ تعققالی ن قے آپ پققر جققو کتققاب نققازل‬
‫فرمائی اور اپنی جو نعمتیں آپ کو عطا فرمائیں وہ بعض اوقات تققو ایققک ہی صققورت‬
‫میں دی گئیں اور بعض اوقات مختلف صورتوں میں۔ ہم اللہ تعقالی سقے کامیقابی کقی‬
‫دعا کرتے ہیں اور عافیت طلب کرتے ہیں۔‬
‫اس نعمت کی صورت خواہ کچھ بھی ہو‪ ،‬اللہ تعالی نے یہ بات تو واضح فرمققا دی ہے‬
‫کہ اس کے رسول کی اطاعت فرض ہے۔ جب کوئی شخص یہ جان ل قے ک قہ کققوئی حکققم‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے دیا ہے تو پھر اس کے پاس کوئی عذر باقی نہیں‬
‫رہتا۔ ہر انسان کو دین کے لئے آپ کی راہنمائی کی ضرورت ہے۔ اللہ تعققالی کققی کتققاب‬
‫میں جو احکام دیے گئے ہیں‪ ،‬چونکہ سنت اس کی وضاحت کرتی ہے اس لئے سنت کقے‬
‫ذریعے اس شخص پر اللہ کی حجت تمام ہو جاتی ہے جو یہ جان لے کہ یہ چیز رسول اللہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت ہے۔‬
‫سنت خواہ اللہ کی کتاب کی کسی نص کی وضاحت کرتی ہو یا کسققی ایس قے حکققم‬
‫کے بارے میں ہو جو کتاب اللہ میں درج نہیقں ہے‪ ،‬اس پقر عمقل کرنقا ہر صقورت میقں‬
‫ضروری ہے کیونکہ اللہ کے رسول کا حکم اللہ کے حکم کے مطابق ہی ہوتا ہے۔ یہی بققات‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ابو رافع کی روایت کردہ اس حدیث میں ارشاد‬
‫فرمائی جو ہم اوپر بیان کر چکے ہیں۔‬
‫اب ہم انشاء اللہ سنت کی ان دونوں اقسام کی وضاحت کریں گے جققو کقہ ہم پہلقے‬
‫ہی بیان کر چکے ہیں کہ خواہ سنت کتاب اللہ کے کسی حکم کی وضقاحت کرتقی ہ ہو یقا‬

‫‪111‬‬
‫ایسا حکم بیان کرتی ہو جو قرآن میں مذکور نہیں ہے۔ اس س قے ان بققاتوں کققی مزیققد‬
‫وضاحت ہو جائے گی جو ہم نے یہاں بیان کر دی ہیں۔‬
‫اب ہم اللہ کی کتاب اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کققی سققنت ک قے بققارے‬
‫میں ان باتوں کو بیان کریں گے‪:‬‬
‫• سنت کے ذریعے اللہ کی کتاب کے ناسخ و منسوخ کے استدلل کا بیان‬
‫• کتاب اللہ میں بیان کردہ احکام کا بیان جن کے ساتھ رسول اللہ صلی اللققہ علیققہ‬
‫و ٰالہ وسلم کی سنت بھی ہے‬
‫•)کتاب اللہ کے( ان احکام کا ذکر جن کی وضاحت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ‬
‫وسلم نے سنت کے ذریعے فرمائی ہے کہ انہیں کیسے اور کس وقت ادا کیا جائے‬
‫• اللہ تعالی کے احکام میں عمومی احکام کا تذکرہ جو کہ عام ہیں‬
‫• اللہ تعالی کے ایسے بظاہر عمومی احکام کا ذکر جو کہ مخصوص صورتحال کے‬
‫لئے ہیں‬
‫• ایسی سنت کا ذکر جس کے بارے میں اللہ کی کتاب میں کوئی حکم درج نہیں‬
‫ہے‬

‫‪112‬‬
‫بصصاب ‪ :8‬اللصص ہ اور اس کصص ے رسصصول کصصی‬
‫بیان کرد ہ ممانعتیں‬
‫سائل‪ :‬برائے کرم میرے لئے آپ اللہ جل ثناوہ اور نققبی صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کققی‬
‫جانب سے ممانعت کے احکام کو بیان کر دیجیے۔ )یہ خیال رہے کہ( اس میں کوئی بققات‬
‫رہ نہ جائے۔‬
‫شافعی‪ :‬ممانعت کے احکام کی دو اقسام ہیں۔ ایک تو یہ کہ ایک چیز سے منققع کققر ک قے‬
‫اسے حرام قرار دیا گیا ہو۔ یہ صرف اسی صورت میں حلل ہو سققکتا ہے اگققر اس کقے‬
‫بارے میں اللہ کی کتاب یا اس کے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کقی زبققان سقے کققوئی‬
‫بات پتہ چلے۔ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے کسی بات سے منع فرمایا تو‬
‫وہ حرام ہو جائے گی۔ جیسا کہ میں بیان کر چکا ہوں اس کے حرام نہ ہونے کققی کققوئی‬
‫وجہ نہیں ہے سوائے اس کے کہ کوئی بات اس میں مضمر ہو )جس کققی بنیققاد پققر اس قے‬
‫حلل قرار دیا جا سکے۔(‬
‫سائل‪ :‬یہ جو بات آپ نے ابھی بیان کی ہے اس کی کوئی مثال بیان کیجیے جو اس کققے‬
‫معنی کی وضاحت کر سکے۔‬
‫شافعی‪ :‬تمام خواتین سے ازدواجی تعلقات قائم کرنا )مققردوں کقے لئے( حققرام ہے۔ یقہ‬
‫صرف دو وجہ سے جائز ہے‪ :‬ایک تو نکاح )کققر کقے بیققوی سقے( یققا پ ھر اپنققی کنیققز سقے‬
‫ازدواجی تعلقات قائم کرنا۔ انہی دونوں صورتوں کققی الل قہ تعققالی ن قے اجققازت دی ہے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت قائم فرمائی کہ حققرام ازدواجققی تعلقققات‬
‫کو جائز کرنے کے لئے "نکاح" کیسے کیا جائے؟ آپ نے سنت قائم فرمائی کہ )نکققاح ک قے‬
‫موقع پر( سرپرست موجود ہو‪ ،‬گواہ ہوں اور خققاتون اگققر کنققواری ن قہ ہو تققو اس سقے‬
‫اجازت )الفاظ میں( لی جائے۔ ان دونوں )میاں بیوی( کی رضا منققدی سقے متعلقق آپ‬
‫کی سنت اس بات کی دلیل ہے کہ شادی دونوں کی رضا مندی سے ہونی چققاہیے۔ اس‬
‫معاملے میں مرد و عورت میں کوئی فرق نہیں ہے۔‬
‫جب نکاح میقں یقہ چقار شقرائط‪ ،‬میقاں اور بیقوی کقی رضقا منقدی‪ ،‬سرپرسقت کقی‬
‫موجودگی اور گواہ‪ ،‬پوری کر دی جائیں تو نکاح ہو جائے گا۔ سوائے ان حالت ک قے جققن‬
‫کی تفصیل میں آگے بیان کروں گا۔ جب نکاح کرتے ہوئے ان شرائط میں سے ایک بھی‬
‫پوری نہ ہو تو نکاح درست نہ ہو گا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ یہ نکاح سے متعلق رسول اللققہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی قائم کردہ سنت کے مطابق نہیں ہے۔ اگر )نکاح کے وقققت(‬
‫حق مہر طے کر لیا جائے تو یہ پسندیدہ معاملہ ہے لیکن اگر یہ طے نہ کیققا جققائے تققو نکققاح‬
‫بہرحال غلط نہ ہو گا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ اللہ تعالی کے نکاح سے متعلققق احکققام میققں‬
‫مہر کو بیان نہیں کیا گیا۔ یہ بحث اور مقام پر )کتاب الم میں( بھی کی گئی ہے۔‬
‫نوٹ‪ :‬نکاح کی یہ چار شرائط امام شافعی کے نزدیک ضروری ہیں۔ امام ابققو حنیف قہ علی قہ الرحم قۃ ک قے‬
‫نزدیک میاں اور بیوی کی رضامندی اور گواہوں کا ہونا نکاح کی شرائط میققں س قے ہے۔ ان ک قے بغیققر‬
‫نکاح نہ ہو گا۔ ان کے نزدیک خاتون کے سرپرست کے بغیر بھی نکاح ہو جائے گا۔ اس کی وجہ یہ ہے کقہ‬
‫ان کے نزدیک سرپرست کی موجودگی سے متعلق احادیث معاشرتی ہدایات س قے متعلققق ہیققں ن قہ ک قہ‬
‫قانونی معاملت سے۔‬

‫اس معاملے میں ایک ایسی خاتون )جو معا ‪۱‬شرے میں( عققزت دار سققمجھی جققاتی‬

‫‪113‬‬
‫ہے یا وہ جو عزت دار نہیں سمجھی جاتی‪ ،‬دونوں برابر ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے ک قہ حلل‬
‫و حرام‪ ،‬اور سزاؤں کے معاملت میں ان سے متعلق )قانون( یکساں ہے۔‬
‫اگر نکاح ایسی صورتحال میں کیا گیا ہے جو میں نے بیان کئے تو نکاح ہو جققائے گققا۔‬
‫اگر نکاح ایسی صورتحال میں کیا گیا جس میں نکاح سے منع کیا گیا ہے تو نکاح نقہ ہو‬
‫گا۔ جب نکاح ان حالت میں کیا گیا جن سے الل قہ تعققالی ن قے اپنققی کتققاب میققں یققا اپن قے‬
‫رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زبان سے منع فرما دیا ہو تو نکاح درست ہی نہیققں‬
‫ہو گا۔ وہ حالت یہ ہیں‪:‬‬
‫• اگر ایک شخص )اپنی بیوی کی موجودگی میں( اس کی بہن س قے نکققاح کققرے۔‬
‫اللہ تعالی نے دو بہنوں کو نکاح میں جمع کرنے سے منع فرمایا ہے۔‬
‫• ایک شخص پانچویں شادی کرے کیونکہ اللہ تعالی نے چار کی حد مقرر کققی ہے‬
‫اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے یہ واضح فرما دیا ہے ک قہ چققار بیویققوں‬
‫کی موجودگی میں پانچویں شادی کی اجازت نہیں ہے۔‬
‫• ایک شخص )اپنی بیوی کی موجودگی میں( اس کی پھوپھی یا خالہ سے شادی‬
‫کر بیٹھے۔ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس سے منع فرمایا۔‬
‫• ایک شخص کسی خاتون سے اس کی عدت کے دوران شادی کر لے۔‬
‫ان حالت میں نکاح کرنا کسی صورت بھی درست نہیں ہے۔ ان حالت میں نکاح کرنے‬
‫سے منع فرمایا گیا ہے اور اس معاملے میں کسی ایک عالم کو ب ھی اختلف نہیققں ہے۔‬
‫اس کے علوہ اور بھی صورتیں ہیں‪ :‬جیسا کہ نبی صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم نقے نکققاح‬
‫شغار سے منع فرمایا۔ اسی طرح آپ نے نکاح متعہ سے بھی منع فرمایا۔‬
‫نوٹ‪ :‬عرب معاشرے میں چند ایسی اقسام کی شادی کا رواج موجود تھا جن میں اخلقققی قبققاحتیں‬
‫پائی جاتی تھیں۔ نکاح شغار وٹے سٹے کی ایسی شادی کو کہا جاتا ہے جس میں وٹے سٹے ہی کو م ہر‬
‫قرار دے کر خواتین کو حق مہر سے محروم کر دیا جائے۔ چونکہ یہ خواتین پر صریح ظلم ہے اس وجقہ‬
‫سے اس سے منع فرمایا گیا۔‬
‫متعہ عارضی شادی کو کہتے ہیں جس میں طے شدہ وقت کے بعد طلق خود بخود واقققع ہو جققائے۔‬
‫اس میں گواہوں کی ضرورت بھی نہیں ہوتی۔ عرب معاشرے میں بالعموم طوائفوں سے ایسقا تعلقق‬
‫رکھا جاتا تھا۔ اس طریق کار کی اخلقی قباحت کے باعث دین میں اس سے منع کیا گیا ہے۔‬

‫اسی طرح آپ نے حالت احرام میں اپنا نکاح کرنے یا کسی کا نکققاح کروانقے سقے منقع‬
‫فرمایا۔ ان تمام حالت میں بھی ہم نکاح کو ختم کروا دیں گے کیققونکہ ان حققالت میققں‬
‫نکاح سے منع فرمایا گیا ہے۔ یہ اسی طرح ہو گا جیسا کہ ان حالت میں ہم اس قے ختققم‬
‫کر دیتے ہیں جسے ہم اوپر بیان کر چکے ہیں۔ اس معقاملے میقں دوسقرے ا ہل علقم ہم‬
‫سے مختلف رائے رکھتے ہیں جسے ہم دوسری جگہ پر )کتاب الم میں( بیققان کققر چک قے‬
‫ہیں۔ یہی معاملہ کسی خاتون کی ایسی شادی کا ہے جو اس کی اجازت ک قے بغیققر ہہہو۔‬
‫اگر وہ بعد میں اجازت دے بھی دے تب بھی یہ نکاح درسققت نہیققں ہے کیققونکہ نکققاح ک قے‬
‫معاہدے کے وقت وہ ایسا نہیں چاہتی تھی۔‬
‫اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالقہ وسقلم نقے غقرر والقے لیقن دین‪ 7‬سقے منقع‬
‫فرمایا۔ اسی طرح آپ نے سوائے عرایا کے تازہ کھجور کا )چھوہاروں سے( تبققادلہ کرن قے‬
‫‪ 7‬غرر س ے مراد ایس ے لین دین ہیں جن میں بیچی جصصانی والصصی چیصصز کصصی خصوصصصیات‬
‫متعین ن ہ ہوں ۔ چونک ہ اس ک ے نتیج ے میں لڑائی ج ھگصصڑ ے جنصصم لص ے سصصکت ے ہیصصں‪ ،‬اس لئ ے‬
‫اس س ے منع فرمایا گیا ۔‬

‫‪114‬‬
‫سے منع فرمایا۔ اور اس قسم کی دیگر مثالیں۔ اس کققی ایققک اور مثققال یقہ ہے کقہ ہر‬
‫شخص پر دوسرے کا مال لے لینا حرام ہے سوائے اس کے کہ اس کققی اجققازت دی گئی‬
‫ہو۔ یہ اجازت سوائے ایسی تجارت کے اور کسققی بنیققاد پققر نہیققں ہہہو سققکتی جققس سقے‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے منع نہ فرمایا ہو۔ رسول اللہ صلی اللہ علیققہ و ٰالققہ‬
‫وسلم نے کسی بھی ایسے لین دین کی اجازت نہیں دی جس سے کققوئی شققخص اپن قے‬
‫بھائی کا مال ناجائز طریقے پر لے لے۔ تجارت میں ایک ناجائز کام کرنا کسی حرام کو‬
‫حلل نہ کر دے گا اور نہ ہی کوئی کام اس وقت تک حلل ہو گققا جققب تققک کقہ اس میققں‬
‫تمام ناجائز امور سے اجتناب نہ کیا جائے۔ یہ وہ احکام ہیں جو عام لوگوں کے علم میققں‬
‫بھی ہیں۔‬
‫سائل‪ :‬ایسے کون سے جائز امور ہیں جن سے کسی مخصوص صورتحال میں منع کیققا‬
‫گیا ہو اور یہ امور آپ کی اوپر بیان کردہ ممانعتوں سے مختلف ہوں۔‬
‫شافعی‪ :‬اس کی ایک مثال ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے "صققما )یعنققی‬
‫چادر کو لپیٹ کر اس طرح سے بیٹھنا جس سے پوشیدہ اعضققا کسقی اور پققر ظقاہر ہو‬
‫جائیں(" سے منع فرمایا۔ آپ نے اس سے بھی منع فرمایا کہ کپققڑے کققو اس طققرح سقے‬
‫لپیٹا جائے کہ شرمگاہ اوپر کی طرف ہو۔ آپ نے ایک مرتبہ ایک لڑکے کو دونققوں ہاتھوں‬
‫سے کھانے سے منع فرمایا۔ آپ نے رکابی کے درمیان سے کھانے سے ب ھی منققع فرمایققا۔‬
‫اس کے علوہ آپ سے یہ بھی نقل کیا گیا ہے )اگرچہ اس کے ثبوت میں کچھ شک ہے کہ(‬
‫کوئی شخص دو کھجوریں اکٹھی نہ کھائے‪ 8‬یا کھانے سے پہلے کھجور کے اندر کا حصہ نققہ‬
‫دیکھے یا راستے پر نہ لیٹے۔‬
‫کپڑا پہننا‪ ،‬کھانا کو بھوک مٹانے کے لئے کھانا‪ ،‬اور زمین پر بیٹھنا جائز ہے کیونکہ زمین‬
‫اللہ کی ہے نہ کہ کسی بندے کی۔ ان معاملت میں حضور صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم ن قے‬
‫مخصوص صورتحال میں منع فرمایا اور یہ صورتیں جائز حالت سے کچھ مختلف ہیں۔‬
‫حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے چادر لپیٹ کر بیٹھنے کققی جققس حققالت سقے منققع‬
‫فرمایا وہ صرف وہی حالت تھی جس میں شرمگاہ ظاہر ہو جققائے۔ ی قہ حکققم اس کپققڑے‬
‫سے متعلق ہے جس سے شرمگاہ چھپائی نہ جا سکے۔ آپ نے شققرمگاہ کققو چھپققانے س قے‬
‫منع فرمایا نہ کہ کپڑا پہننے سے۔ آپ نے یہ حکم دیا کہ لباس اس طریققے سقے پہنققا جقائے‬
‫جو شرمگاہ کو چھپا لے۔‬
‫اسی طرح آپ نے لڑکے کو جو دونوں ہاتھوں س قے ک ھانے سقے منققع فرمایققا یققا پ ھر‬
‫رکابی کے درمیانی حصے سے کھانے سے منع فرمایا اس کی وجہ )یہ نہ تھی کہ ی قہ حققرام‬
‫ہے بلکہ( یہ تو اپنی اصل میں مباح ہے۔ دونوں ہاتھوں سے کھانے س قے روکققا اس لئے گیققا‬
‫کہ کھانا کھانے کے آداب کے خلف ہے۔ اپنے میزبان کے سامنے اطمینان س قے کھانققا اچ ھا‬
‫لگتا ہے اور دونوں ہاتھوں سے کھانا شہدے پن کے باعث برا لگتا ہے۔ ک ھانے ک قے اوپققری‬
‫حصے سے شروع کرنے سے اس لئے منع فرمایا ک قہ اس جگ قہ برکققت نققازل ہونققا شققروع‬
‫ہوتی ہے اور پھر نازل ہوتی رہتی ہے۔ جب انسان کناروں سے کھہہا ل قے تققو پھہہر درمیققان‬
‫سے کھانا بھی درست ہے۔‬
‫ایک گزرنے والے کے لئے راستے سے گزرنا جائز ہے کیونکہ یہ جگہ کسی کی ملکیت تو‬
‫نہیں ہے جو یہاں سے گزرنے سے منع کرے۔ )راستے پر لیٹنے سے( ایققک خققاص وج قہ س قے‬
‫منع کیا گیا۔ آپ نے فرمایا‪" ،‬یہ کیڑے مکوڑوں کے چھپنے کی جگہ اور سانپوں کققا راسققتہ‬

‫‪ 8‬اس کی وج ہ ی ہ ہے ک ہ کوئی جلدی جلدی ساری ک ھجوریں ن ہ ک ھا جائ ے اور باقیوں کصص ے‬
‫لئ ے ک ھجوریں جلدی ختم ہو جائیں ۔‬

‫‪115‬‬
‫ہے۔" )مسلم‪ ،‬ترمذی‪ ،‬احمد( آپ نے ایسی صورت میں بھی راستے پقر لیٹنقے سقے منقع‬
‫فرمایا جب راستہ تنگ ہو اور اس پر لیٹنے کے نتیجے میں گزرنے والوں کققی حققق تلفققی‬
‫ہو۔‬
‫سائل‪ :‬اس قسم کی ممانعت میں اور پہلی قسم کی )یعنی ابدی( ممانعت میں کوئی‬
‫فرق ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬جس شخص کو پوری طرح علم ہو گیا کہ نبی صلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم نقے‬
‫کسی کام سے منع فرمایا ہے‪ ،‬اس کے بعد وہ جان بوجھ کر اس کام کو کرتققا ہے تققو وہ‬
‫ایسا کرنے سے ایک گناہ کا ارتکاب کرتا ہے۔ اسے اللہ سے استغفار کرنققا چققاہیے اور اس‬
‫کام کو دوبارہ نہیں کرنا چاہیے۔‬
‫سائل‪ :‬ایسا کرنے وال شخص بھی نافرمان ہے اور آپ نے نکاح اور تجارت سقے متعلققق‬
‫ممانعت کے جو احکام بیان کئے‪ ،‬ان کا کرنے وال بھی نافرمان ہے تو ان دونوں میں کیا‬
‫فرق ہوا؟‬
‫شافعی‪ :‬میں نے نافرمانی کے معاملے میں تققو ان میققں کققوئی فققرق نہیققں کیققا بلکقہ ان‬
‫دونوں کو نافرمان ہی قرار دیققا ہے۔ ہاں یقہ ضققرور ہے کقہ بعققض نافرمانیققاں دوسققری‬
‫نافرمانیوں کی نسبت بڑی ہوتی ہیں۔‬
‫سائل‪ :‬کس بنیاد پر آپ کپڑا لپیٹنے‪) ،‬درمیان سے( کھانا ک ھانے‪ ،‬اور راسققتے میققں لیٹنقے‬
‫کو اتنی بڑی نافرمانی قرار نہیں دیتے جیسا کہ نکاح اور تجققارت ک قے معققاملے میققں آپ‬
‫سمجھتے ہیں؟‬
‫شافعی‪ :‬یہ وہ امور ہیں جو اپنی اصل میں حلل اور جائز ہیں۔ میں نے اسے حلل قققرار‬
‫دیا ہے جس کو حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے حلل قرار دیا اور میققں اس قے حققرام‬
‫سمجھتا ہوں جسے حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے حرام قرار دیا۔ میں اس کام کو‬
‫حرام نہیں سمجھتا جسے حضور نے جائز قرار دیققا ہو۔ کسققی جققائز کققام میققں )کسققی‬
‫خاص صورتحال کے تحت دیے گئے حکم سے متعلقق( نافرمقانی سقے وہ کسقی صقورت‬
‫میں بھی ایک )ابدی( حرام فعل نہیں بن جائے گققا لیکققن یقہ نافرمققانی بققذات خققود ایققک‬
‫حرام فعل ہے۔‬
‫سائل‪ :‬اس کی مثال دیجیے۔‬
‫شافعی‪ :‬ایک شخص کی بیوی یا لونڈی ہے۔ اس کے لئے یہ جائز نہیں کہ وہ ان سے حالت‬
‫حیض یا روزے کی حالت میں ازدواجی تعلقات قائم کرے۔ اگر اس نے ایسا کققر لیققا تققو‬
‫بلشبہ اس نے ایک ناجائز کام کیا لیکن دوسری صورتوں میں ان دونوں سے ازدواجققی‬
‫تعلق قائم کرنا اس کے لئے حرام نہ ہو جائے گا کیونکہ وہ اپنی اصل میں مباح اور حلل‬
‫ہے۔‬
‫کسی شخص کی ملکیت میں مال دوسرے شخص کے لئے لینا حرام ہے سققوائے اس‬
‫کے کہ وہ کسی جائز طریقے سے لیا جائے۔ اسی طرح خواتین سے ازدواجی تعلق قققائم‬
‫کرنا حرام ہے سوائے اس کے کہ نکاح یا ملکیت کقے تعلققق سقے وہ جققائز ہو جققائے۔ اگققر‬
‫کوئی شخص کسی ایسی خاتون سے شادی کر لے جس سقے شققادی کرنققا جققائز نہیققں‬
‫)جیسے بہن( یا کوئی ایسی چیز بیچنے لگے جو حرام ہو )جیسے شراب( تو اس کے لئے‬
‫یہ حرام کام ہو گا۔ ایک حرام کام کسی ناجائز طریقے سے جائز نہیں ہو سکتا کیونکہ یہ‬
‫اپنی اصل میں ہی ناجائز ہے۔ یہ اسی صورت میں جائز ہو گقا جقب اللقہ نقے اسقے اپنقی‬
‫کتاب میں جائز قرار دیا ہو‪ ،‬یا پھر اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی زبققان سققے‬

‫‪116‬‬
‫اسے جائز قرار دیا ہو یا مسلمانوں کے اجماع یا کسی اور قانونی ذریعے سے اس کققی‬
‫اجازت دی گئی ہو۔‬
‫رہیں وہ )مخصوص حالت کی( ممانعتیں جنہیں ابدی طور پر ہر حققالت میققں حققرام‬
‫کرنا مقصود نہ تھا‪ ،‬تو ان کی مثالیں میں پہلے ہی بیان کر چکا ہوں۔ انہیں دوہرانقے کققی‬
‫ضرورت نہیں ہے۔ اللہ تعالی ہمیں گناہوں سے بچائے اور نیکی کی توفیق دے۔‬

‫‪117‬‬
‫باب ‪ :9‬روایات‬
‫روایت میں موجود خامیاں‬
‫سائل‪ :‬ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی کچھ احادیث ایسی ملتی ہیققں جققو‬
‫قرآن کے احکام کے عین مطابق ہوتی ہیں۔ کچھ ایسی احادیث ملتی ہیں جو قرآن کققے‬
‫ظاہری مفہوم کے مطابق ہوتی ہیں اور ان میں اکثر وہی ہوتا ہے جققو قققرآن میققں ہے۔‬
‫کچھ ایسی ہوتی ہیں جو ایسے احکام سے متعلق ہوتی ہیں جققو قققرآن میققں نہیققں ہیققں۔‬
‫کچھ ایسی روایتیں ہوتی ہیں جو ایک دوسرے سے )کسی معاملے میں( متفق ہوتی ہیں‬
‫اور کچھ ایسی جو ایک دوسرے کے متضاد مفہوم پیش کر رہی ہوتی ہیں۔ ان میں سققے‬
‫ایک حدیث منسوخ ہوتی ہے اور دوسری اسے منسوخ کرنے والی )ناسخ(۔ بعض ایسققی‬
‫روایات بھی ہوتی ہیں جن میں ناسخ اور منسوخ کا پتہ چلنا مشکل ہوتا ہے۔‬
‫بعض احادیث ہمیں ایسی ملتی ہیں جن میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے‬
‫کسی کام سے منع فرمایا اور )اہل علم( اس کام کو "حرام" قرار دیتے ہیں۔ کچققھ اور‬
‫احادیث میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے کسی کام سے منع فرمایا ہوتققا ہے‬
‫لیکن )اہل علم( اس منع کرنے کو لزم نہیں بلکہ اختیاری معاملہ قرار دیتے ہیں۔‬
‫ہم یہ بھی دیکھتے ہیں کہ آپ )یعنی اہل علم( بسا اوقات بعققض بققاہم متضققاد احققادیث‬
‫کو بھی قبول کر لیتے ہیں۔ آپ بعض احادیث پر قیاس بھی کر لیتے ہیں‪ ،‬اور بعققض کققو‬
‫چھوڑ دیتے ہیں )اور اس معاملے میں احادیث میں امتیاز برتتے ہیققں(۔ اس فققرق برتن قے‬
‫کی دلیل کیا ہے؟ آپ )علماء( کے درمیان بہت سے امور پر اختلف رائے ب ھی ہوتققا ہے۔‬
‫آپ کچھ احادیث کو ان کے مثل بلکہ بسا اوقات ان سے کمققزور احققادیث کققی بنیققاد پققر‬
‫چھوڑ بھی دیتے ہیں۔ )ایسا کیوں ہے؟(‬
‫شافعی‪ :‬اگر ایک حکم قرآن مجید میں بھی موجود ہو تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ‬
‫وسلم کی سنت ہمیشہ اس کے موافق ہی ہو گی )اور کبھی متضاد نہ ہو گققی(۔ سققنت‬
‫قرآن کی تبیین ہی ہے۔ تبیین اسی کو کہتے ہیں کقہ کسققی جملقے کققی وضققاحت کققر دی‬
‫جائے۔ جب کتاب اللہ کسی معاملے میں خاموش ہو اور اس معققاملے میققں رسققول الل قہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت سے کوئی حکم مل جائے تو اس کی پیروی کرنا ہم‬
‫پر اللہ تعالی کی طرف سے عمومی نوعیت کا فرض ہے۔‬
‫جہاں تک حدیث میں ناسخ و منسوخ کا تعلق ہے تو یہ معاملہ کتاب اللہ میں قرآن کے‬
‫کسی حکم کو دوسرے حکم کے ذریعے منسوخ کر دینے کی طرح ہی ہے۔ بالکقل اسقی‬
‫طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت بھی دوسری سنت سے منسوخ ہو‬
‫سکتی ہے۔ جو بات میں نے ابھی بیان کی ہے اس کققی کچقھ وضققاحت میققں اس کتققاب‬
‫میں اور مقامات پر بیان بھی کر چکا ہوں۔‬
‫ایسی احادیث جن میں متضاد احکام ملتے ہیں اور اس بققات کققی ب ھی کققوئی دلیققل‬
‫نہیں ہوتی کہ ان میقں ایققک حکقم منسقوخ ہے اور دوسقرا ناسقخ‪ ،‬ایسقی احقادیث میققں‬
‫درحقیقت کوئی حقیقی اختلف نہیں ہوتا۔ یہ اصل ً ایک دوسرے سے متفق ہی ہوتی ہیققں‬
‫)لیکن سمجھنے وال بات کو درست طور پر سمجھ نہیں پا رہا ہوتا۔(‬
‫جیسا کہ میں کتاب اللہ اور سنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے بققارے میققں‬
‫اس سے پہلے بیان کر چکا ہوں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰال قہ وسققلم قققوم اور زبققان‬

‫‪118‬‬
‫کے اعتبار سے عرب تھے۔ آپ کبھی ایک عام بات کرتے جس سے مققراد عقام حکقم ہی‬
‫ہوتا اور )عربی زبان کے قاعدے کے مطابق( کبھی عام الفاظ میں ایک بات کرتے لیکن‬
‫اس سے مراد کوئی خاص )شخص‪ ،‬گروہ یا صورتحال( ہوتی۔ کبھی ایسقا ب ھی ہوتقا کقہ‬
‫آپ سے کسی چیز کے متعلق سوال کیا جاتا اور آپ اس کے جققواب میققں کچ قھ ارشققاد‬
‫فرما دیتے۔ اس واقعہ کو دوسروں کے سامنے بیان کرن قے وال )یعنققی راوی( کب ھی اس‬
‫بات کو تفصیل سے بیان کر دیتا اور کبھی اختصار کے سققاتھ۔ اس طققرح س قے بققات کققا‬
‫مطلب )سننے والے کے لئے( کسی حد تک تبدیل ہو جاتا۔‬
‫ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ حدیث بیان کرنے وال کوئی شخص )حضقور صقلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم کا( جواب تو بیان کر دے لیکن اسے سوال کا علم ہی نہ ہو جس س قے اس قے‬
‫اصل صورتحال کا علم ہو سکے کہ یہ جواب کس وجہ سے دیا گیا ہے۔ یہ بھی ہو سکتا ہے‬
‫کہ ایک صقورتحال میقں آپ نقے ایقک حکقم جقاری فرمایقا اور اس سقے بالکقل مختلقف‬
‫صورتحال میں دوسرا حکم جاری فرمایا۔ حدیث سننے والے بعض لوگ صققورتحال کققے‬
‫اس اختلف سے بے خبر تھے جن میں یہ احکام جاری کئے گئے )اور وہ اس قے احکققام کققا‬
‫اختلف سمجھ بیٹھے۔(‬
‫بعض اوقات حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ایک سنت قرآن کے حکققم ک قے عیققن‬
‫مطابق جاری فرمائی اور اسے کسی شخص نے یاد کر لیا۔ کسی شخص نے ایک سنت‬
‫کو اس سے مختلف معنی میں لیا اور دوسرے نے اسے درست معنققی میققں لیققا کیققونکہ‬
‫دونوں افراد کی )ذہنققی اسقتعداد اور( حقالت میقں فققرق ہو سقکتا ہے۔ اب یقہ دونققوں‬
‫احادیث جب بعد کے لوگوں تک پہنچیں تو سننے والوں کو اس میققں اختلف محسققوس‬
‫ہوا حالنکہ درحقیقت ان میں کوئی اختلف نہ تھا۔‬
‫بعض اوقات حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ایک )عربی زبققان کقے عققام اسققلوب‬
‫میں( عام جملے سے کسی چیز کقی حرمققت اور حلققت بیققان فرمققائی )جبکقہ یقہ کسققی‬
‫خاص صورتحال سے متعلق تھا(۔ اس کے بعد آپ نے اپنے عمل سے یہ بتا دیا ک قہ آپ کققا‬
‫ارادہ کسی حرام کو حلل یا حلل کو حرام کرنے کا نہیں تھا )بلکہ آپ کا ارشققاد کسققی‬
‫خاص صورتحال سے متعلق تھا۔ حدیث سننے والے نے صققرف ایققک بققات ہی سققنی اور‬
‫غلط فہمی میں مبتل ہو گیا کہ سنت میں اختلف پایا جاتققا ہے۔( اس طققرح کقی )غلققط‬
‫فہمی کی( مثالیں کتاب اللہ کے بارے میں بھی موجود ہیں۔‬
‫نوٹ‪ :‬اس کی مثال وہ مشہور حدیث ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ایک میت کققے گ ھر‬
‫کی خواتین کو روتا پیٹتا دیکھ کر فرمایا‪" ،‬یہ اسے رو رہی ہیں جبکہ اسے عذاب ہو رہا ہے۔" سیدنا عمر‬
‫رضی اللہ عنہ اس جملے سے یہ سمجھے کہ شاید میت کے ورثا کے رونے پیٹنے سے مرنے والے کو عذاب‬
‫ہوتا ہے۔ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا نے جب ان کی یہ بات سنی تو وضاحت فرمائی کقہ میققت کققو ورثققا‬
‫کے رونے پیٹنے کی وجہ سے عذاب نہیں ہو رہا بلکہ حضور نے یہ فرمایا تھا کہ "یقہ تققو اسقے رو ر ہی ہیققں‬
‫جبکہ اس میت کا حال یہ ہے کہ اسے عذاب ہو رہا ہے۔"‬

‫ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت کے ایققک حکققم کققو‬
‫دوسرے حکم سے منسوخ فرما دیا۔ اب یہ تو نہیں ہو سکتا کہ آپ حکم کی اس تبققدیلی‬
‫کی وضاحت نہ فرمائیں۔ آپ نے تو وضاحت فرما دی لیکن جس شخص ن قے آپ ک قے ی قہ‬
‫احکام سنے اس نے ان میں سے ایک کو یاد کر لیا اور دوسرے حکم کو وہ آگے منتقل نہ‬
‫کر سکا۔ یہ دوسرا حکم بھی ضائع نہیں ہوا بلکہ اب بھی موجود ہے اور جققو چققاہے اس قے‬
‫حاصل کر سکتا ہے۔‬
‫جو کچھ میں نے سنت کے بارے میقں بیققان کیقا ہے یقہ اس بنیققاد پقر ہے کقہ آپ یعنققی‬

‫‪119‬‬
‫)رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم( نے خود بھی اپنے احکام کے مابین فققرق کیققا ہے۔‬
‫احکام کے اس فرق کے معاملے میں بھی ہم پر لزم ہے کہ ہم آپ کققی اطققاعت کریققں۔‬
‫کوئی )عالم( بھی یہ نہیں کہتا کہ حضور نے اپنے احکام میں فرق کو ملحوظ خاطر نہیں‬
‫رکھا۔ اگر کوئی یہ بات کہتا ہے کہ "احکام میں کوئی فرق نہیں ہے" جبکقہ یقہ فققرق خققود‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے روا رکھا ہے‪ ،‬تو وہ شخص ایسا یا تو لعلمی کقی بنیقاد‬
‫پر کہتا ہے یا پھر وہ شک کرنے کے مرض میں مبتل ہے۔ یقینا ً اللہ تعالی کی اطققاعت ) ہر‬
‫معاملے میں( حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی پیروی ہی میں ممکن ہے۔‬
‫جیسا کہ میں پہلے بیان کر چکا ہوں کہ اگر ہمیں سنت میں کوئی اختلف نظر آئے تو‬
‫ایسا یا تو اس وجہ سے ہو سکتا ہے کہ اس بات کو مکمل طور پققر محفققوظ نہیققں رک ھا‬
‫گیا جس کے نتیجے میں یہ اختلف پیدا ہو گیا۔ اب جو کچھ ہم تک نہیں پہنچ سکا اسے ہم‬
‫کسی دوسری روایت سے معلوم کر سکتے ہیں یا پھر یہ )اختلف( محققض حققدیث بیققان‬
‫کرنے والے کے وہم یا غلط فہمی کا نتیجہ ہے۔ ہمیں ایسی کوئی ب ھی حقدیث نہیققں ملققی‬
‫جس میں بظاہر اختلف پایا جاتا ہو اور ہم اس اختلف کی وجہ نہ جانتے ہوں۔ وجو ہات‬
‫میں وہ تمام باتیں شامل ہیں جو میں اوپر بیان کر چکا ہوں۔‬
‫اگر دو احادیث میں اختلف پایا جائے تو اسے حل کرنے کا ایک اور طریق قہ ہے اور وہ‬
‫یہ ہے کہ ہم اس حدیث کو اختیار کر لیں گے جو ان دونوں میں سے زیادہ مستند ہے۔ ان‬
‫میں سے زیادہ مستند وہی ہو گی جس کے بارے میں کوئی دلیل ہمیں کتاب اللہ‪ ،‬سققنت‬
‫نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم‪ ،‬یا دوسرے شواہد جو میں پہلے بیان کر چکا ہوں سے مققل‬
‫رہی ہے۔ ہم اس حدیث کو اختیار کریں گے جو زیادہ قوی ہے اور دلئل سے زیادہ مستند‬
‫ثابت ہوئی ہے۔‬
‫ہمیں آج تک کوئی ایسی دو حدیثیں نہیں ملیں جن کے اختلف کو حل نہ کیا جا سکے‬
‫یا اوپر بیان کئے گئے دلئل یعنی کتاب اللہ‪ ،‬سنت اور دیگر دلئل سے مناسبت کی بنیاد‬
‫پر کسی ایک کو ترجیح نہ دی جا سکے۔‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے جس چیز سے منع فرما دیا وہ حرام ہے۔ اگققر‬
‫ہمیں کوئی ایسی دلیل مل جائے جققس سقے یقہ معلققوم ہہہو کقہ وہ حققرام نہیققں ہہہے )بلکقہ‬
‫ناپسندیدہ کے درجے میں ہے( تو پھر ہم اسے اسی طرح تسلیم کر لیں گے۔‬
‫جہاں تک رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت پر قیاس کرنے کققا تعلققق ہے‬
‫تو اس کی دو اقسام ہیں۔ ان میں سے ہر قسم پھر متعدد ذیلی اقسام پر مشتمل ہے۔‬
‫سائل‪ :‬وہ اقسام کیا ہیں؟‬
‫شافعی‪) :‬پہلی قسم تو یہ ہے کہ( اللہ تعالی نے اپنے بندوں کو اپنققی کتققاب اور اپنقے نققبی‬
‫کے زبان کے ذریعے اپنی عبادت و اطاعت کا حکم دیا ہے۔ اس کققی عبققادت و اطققاعت‬
‫کے اس حکم کو چیلنج نہیں کیا جا سکتا۔ اللہ تعالی نے جو احکقام اپنقے بنقدوں پقر لزم‬
‫کئے ہیں‪ ،‬رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس کے معنی کی وضققاحت فرمققا دی‬
‫ہے یا پھر یہ وضاحت ہم تک آپ سے منسوب احادیث کے ذریعے پہنچی ہے۔ اس معققاملے‬
‫میں کوئی بھی ایسا حکم باقی نہیں رہ گیا ہے جس کی وضققاحت نقہ کققی گئی ہو۔ ا ہل‬
‫علم کے لئے ضروری ہے کہ وہ سنت ک قے راسققتے کققو اختیققار کریققں اگققر اس کقے معنققی‬
‫)قرآن کے معنی کے( مطابق ہوں۔ اس سے متعدد اقسام مزید نکلتی ہیں۔‬
‫دوسری قسم یہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم نقے کسقی چیققز کققو عقام‬
‫طور پر حلل قرار دیا اور کسی خاص )شخص‪ ،‬گروہ یا صورتحال( کے لئے اسے حققرام‬

‫‪120‬‬
‫قرار دے دیا۔ ہم اسے عام طور پر حلل ہی سقمجھیں گقے اور مخصقوص )فقرد‪ ،‬گقروہ‬
‫وغیرہ( کے لئے اسے حرام ہی سمجھیں گے۔ ہم اس تھوڑے س قے خققاص پققر قیققاس نہیققں‬
‫کریں گے بلکہ اکثریت کے عام حکم پر قیاس کرتے ہوئے )دیگر صورتوں کے لئے احکققام‬
‫اخذ کریں گے( کیونکہ اکثریت پر قیاس کرنا اقلیت پر قیاس کرنے سے بہتر ہے۔‬
‫بالکل یہی معاملہ اس کے برعکس صورت میں ہو گا کہ اگر آپ نے ایک چیز کو عققام‬
‫طور پر حرام قرار دیا اور اس میں کسی خاص )شخص‪ ،‬گروہ یققا صققورتحال( ک قے لئے‬
‫اسے حلل قرار دیا۔ اسی طرح اگققر اللقہ تعققالی نقے کققوئی حکققم فققرض قققرار دیققا اور‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس میں کسی خاص )فرد‪ ،‬گروہ یا صققورتحال(‬
‫کے لئے تخفیف فرما دی۔ جہاں تک قیاس کا تعلق ہے تو اسے صققرف قققرآن‪ ،‬سققنت اور‬
‫آثار )صحابہ( سے حاصل کردہ احکام پر ہی کیا جا سکتا ہے۔‬
‫نوٹ‪ :‬اس کی مثال یہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم ن قے اسققراف ک قے بققاعث مققردوں کققو‬
‫ریشم پہننے سے منع فرمایا۔ ایک صحابی نے خارش کے بققاعث ریشققم کققی قمیققص پہننقے کققی اجققازت‬
‫چاہی تو آپ نے اس مخصوص صورتحال میں اس کی اجازت دے دی۔‬

‫ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کی ثابت شدہ مستند حققدیث کققے خلف رائے‬
‫قائم کریں‪ ،‬مجھے امید ہے کہ انشاء اللہ ہمارے معاملے میں کبھی ایسا نہیں ہو گا۔ ایسققا‬
‫کرنے کا حق کسی کو بھی حاصل نہیں ہے۔ ہاں یہ ضرور ہو سکتا ہے ک قہ کسققی شققخص‬
‫کو ایک حدیث کا علم ہی نہ ہو یا یہ اس کے ذہن ہی میں نہ رہے یا وہ اسے سمجھنے میں‬
‫غلطی کر بیٹھے اور اس بنیاد پر وہ اس حدیث کے خلف رائے قائم کققر لقے لیکققن جققان‬
‫بوجھ کر کوئی بھی ایسا نہیں کرے گا۔‬
‫سائل‪ :‬یہ جو اقسام آپ نے بیقان فرمقائی ہیقں‪ ،‬ان میقں سقے ہر ایقک کقی مثقال بیقان‬
‫کیجیے۔ کیا ہی اچھا ہو کہ آپ میرے ہر سوال کے جواب میں جامع اور مختصر بات بیان‬
‫کر دیجیے جو میں بھول نہ سکوں۔ سنت نبی صققلی اللقہ علیقہ و ٰالقہ وسققلم کقے ناسققخ و‬
‫منسوخ سے ابتدا فرمائیے اور اس کی مثالوں کو قرآن کے ساتھ بیان کیجیے اگرچہ آپ‬
‫کو اپنی فرمائی ہوئی بات کو دوہرانا پڑے۔‬
‫شافعی‪ :‬اللہ تعالی نے پہلے اپنے رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم پققر ی قہ لزم کیققا ک قہ آپ‬
‫بیت المقدس )یروشلم( کی طرف رخ کر کے نماز ادا کریققں۔ اب بیققت المقققدس قبل قہ‬
‫بن گیا اور اس زمانے میں جب حضور صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس کققی جققانب رخ‬
‫فرمایا‪ ،‬تو کسی کے لئے یہ جائز نہ رہا کہ وہ کسی اور جانب منہ کققر ک قے نمققاز ادا کققرے۔‬
‫اس کے بعد اللہ تعالی نے بیت المقدس کے قبلہ بنائے جانے کققا حکققم منسققوخ فرمققا دیققا‬
‫اور اپنے رسول اور عام لوگوں کو حکم دیا کہ وہ کعبہ کو قبلہ بنا لیں۔ جیس قے ہی کعب قہ‬
‫قبلہ بنا‪ ،‬اب کسی مسلمان کے لئے یہ جائز نہیں ک قہ وہ سققوائے خطققرے کققی حققالت ک قے‪،‬‬
‫کسی اور جانب منہ کر کے نماز ادا کرے۔ اب یہ بھی جائز نہیں کہ وہ کب ھی دوبققارہ بیققت‬
‫المقدس کی جانب رخ کر کے نماز ادا کر سکے۔‬
‫بیت المقدس کی جانب رخ کرنے کا یہ حکم اپنے زمانے میں حق تھا جب نققبی صققلی‬
‫اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس کی طرف رخ انور فرمایا۔ جب آپ نے )اللہ کقے حکققم سقے(‬
‫قبلے کو تبدیل کر لیا تو اب قیامت تک کے لئے حق یہی ہے کہ مسجد الحرام کی جققانب‬
‫منہ کیا جائے۔ بعینہ یہی معاملہ کتاب اللہ اور سنت نبی کے دوسرے منسوخ احکام کا ہے۔‬
‫کتاب و سنت کے اس ناسخ و منسوخ کی وضاحت اس بققات کققی دلیققل ہے کقہ اگققر‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کوئی سنت قققائم فرمققائیں اور اللقہ تعققالی آپ کققو‬

‫‪121‬‬
‫اس کی بجائے کسی اور بات کا حکم دے دے تو یہ لزم ہے کہ آپ اس دوسری سنت کو‬
‫لوگوں تک پہنچائیں تاکہ وہ منسوخ حکم پر ہی عمققل کرت قے ن قہ رہ جققائیں۔ کسققی ایسقے‬
‫شخص کو اس معاملے میں کوئی غلط فہمی نہیں ہونی چاہیے جو عربی زبان یا کتققاب‬
‫و سنت کے باہمی تعلق سے نابلد ہے کہ اگر رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم کققوئی‬
‫سنت جاری فرمائیں اور اس معاملے میں قرآن میں کوئی حکم آ جائے تو کتققاب اللققہ‪،‬‬
‫سنت کو منسوخ کر دیتی ہے )ایسا ہرگز نہیں ہے۔(‬
‫سائل‪ :‬کیا یہ ممکن ہے کہ سنت‪ ،‬کتاب اللہ کے خلف کوئی حکم جاری کر سکے؟‬
‫شافعی‪ :‬بالکل نہیں‪ ،‬کیونکہ اللہ جل ثناؤہ نے اپنے بندوں پققر دو طققرح س قے حجققت قققائم‬
‫فرمائی ہے۔ ایک تو اللہ کی کتاب ہے اور دوسرے اس کے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم‬
‫کی سنت۔ ان دونوں کی بنیاد کتاب اللہ ہی میں ہے جس میں سنت پر عمل کرنققے کققا‬
‫حکم دیا گیا ہے۔ یہ ممکن ہی نہیں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ایک سققنت‬
‫قائم فرما دیں اور جققب اسقے منسققوخ کریقں تققو اس کققی ناسققخ سققنت جققاری ہی نقہ‬
‫فرمائیں۔ ناسخ )منسوخ کرنے وال( حکم وہی ہو گا جو دونوں میں سے بعد وال ہو گققا۔‬
‫کتاب اللہ کے اکثر ناسخ احکام کا علم ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم کققی‬
‫سنت ہی سے ہوتا ہے۔‬
‫جب سنت قرآن کے ناسخ احکام کو بیان کرتی ہے اور ناسخ اور منسوخ احکققام کقے‬
‫مابین فرق کرتی ہے تو یہ ناممکن ہے کہ کوئی سنت قرآن س قے منسققوخ ہو جققائے اور‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم ایسی سنت جاری نہ فرمائیں جققو پہلققی سققنت کققو‬
‫منسوخ کر رہی ہو۔ )یہ میں اس لئے بیان کر رہا ہوں کہ( جس بندے پققر اللقہ کققی حجققت‬
‫پوری ہو چکی ہے اسے اس معاملے میں کوئی شبہ باقی نہ رہ جائے۔‬
‫سائل‪ :‬اگر مجھے قرآن کا کوئی حکم اپنے ظاہری الفققاظ میققں عققام مل قے اور اس ک قے‬
‫ساتھ کوئی سنت بھی قرآن کے اس حکم کی وضاحت کرتی ہوئی ملے لیکن ی قہ سققنت‬
‫قرآن کے ظاہری الفاظ کے خلف ہو تو کیا ہم یہ نہ سمجھ لیں گے کہ یہ سنت قرآن سے‬
‫منسوخ ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬یہ کسی عالم کی رائے نہیں ہے۔‬
‫سائل‪ :‬ایسا کیوں ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬اللہ تعالی نے اپنے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسقلم پقر آپ کقی جقانب کقی جقانے‬
‫والی وحی کی پیروی لزم کی‪ ،‬آپ کقے راہ راسققت پققر ہونے کققی خققود گققواہی دی اور‬
‫لوگوں پر آپ کی اطاعت کو فرض کیا۔ جیسا کہ میں پہلے عرض کر چکا ہوں کہ زبققان‬
‫میں کئی معانی کا احتمال ممکن ہے۔ بعققض اوققات اللقہ کققی کتققاب میققں کققوئی حکققم‬
‫بظاہر عام لگتا ہے لیکن یہ کسی خاص )شققخص‪ ،‬گققروہ یققا صققورتحال( کقے لئے ہوتققا ہے‬
‫اسی طرح بعض اوقات ایک حکم بظاہر خاص لگتا ہے لیکن وہ عمومی حکققم ہوا کرتققا‬
‫ہے۔ اس کی وضاحت سنت سے ہوتی ہے۔ اللہ کی کتاب کے سقاتھ سقنت کقا مققام یہ ہی‬
‫ہے۔ سنت کبھی کتاب اللہ کی مخالف نہ ہو گی بلکہ قرآن کے احکققام ک قے عیققن مطققابق‬
‫کتاب اللہ کی پیروی کرتی ہو گی یا پھر یہ کتاب اللہ کے احکام کققی وضققاحت کرتققی ہو‬
‫گی۔ یہ ہر حال میں کتاب اللہ کی پیروی ہی کرے گی۔‬
‫سائل‪ :‬آپ نے جو فرمایا کیا اس کی کوئی دلیل قرآن مجید سے مل سکتی ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬ان میں سے بعض تو میں اسی کتاب میں بیان کر چکققا ہوں۔ اللقہ تعققالی نقے‬
‫نماز‪ ،‬زکوۃ اور حج کو فرض کیا ہے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے اس کی‬

‫‪122‬‬
‫وضاحت فرمائی کہ نماز کیسے ادا کققی جققائے؟ نمققازوں کققی تعققداد کتنققی ہے؟ ان ک قے‬
‫اوقات کیا ہیں؟ اس میں کیا اعمال ہیں؟ مال میں کتنی زکوۃ لزم ہے؟ کققس مققال پققر‬
‫زکوۃ ہے اور کس پر نہیں؟ زکوۃ کس وقت دی جائے؟ حج کیسے کیا جائے؟ حج میں کیا‬
‫افعال درست ہیں اور کن سے بچنا چاہیے؟‬
‫َ‬
‫ما" یعنققی‬ ‫ة فَققاقْط َُعوا أي ْقدِي َهُ َ‬
‫سارِقَ ُ‬‫سارِقُ َوال ّ‬ ‫میں نے اللہ تعالی کے ان ارشادات کہ "َوال ّ‬
‫ةَ‬
‫مققائ َ‬
‫مققا ِ‬
‫من ْهُ َ‬
‫حقدٍ ِ‬ ‫ّ‬ ‫ُ‬
‫دوا كقل َوا ِ‬ ‫جل ِق ُ‬ ‫َ‬
‫ة َوالّزان ِققي فا ْ‬‫"چور مرد و عورت کے ہاتھ کاٹ دو" اور "الّزان ِي َ ُ‬
‫ة " یعنی "زانی مرد و عورت میں سے ہر ایک کو سققو کققوڑے مققارو" کا بھی ذکققر کیققا ہے۔‬ ‫جل ْد َ ٍ‬
‫َ‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے سنت قائم فرمائی کہ صرف اسی چور کققا ہاتھ‬
‫کاٹا جائے گا جس نے ربع دینار یا اس سے زائد کی چوری کی ہو اور کققوڑے کنققوارے یققا‬
‫غلم بدکاروں کے لئے ہیں نہ کہ آزاد شادی شدہ بدکاروں کے لئے۔ رسول اللقہ صققلی اللقہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم کی سنت نے بتایا کقہ قققرآن کقے یقہ احکققام کچقھ مخصققوص چققوروں اور‬
‫بدکاروں کے لئے ہیں جبکہ بظاہر ان آیات کا مفہوم عام معلوم ہوتا ہے۔‬
‫سائل‪ :‬آپ نے جو کچھ فرمایا‪ ،‬مجھے اس سے اتفاق ہے لیکن کیا آپ نبی صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم سے مروی اس روایت کے بارے میں کققوئی دلیققل پیققش کققر سققکتے ہیققں کقہ‪:‬‬
‫"تمہارے پاس میری جانب سے جو کچھ پیش کیا جائے اسے کتاب اللہ پر پیش کققرو اگققر‬
‫یہ اس کے موافق ہو تو وہ بات میں نے ہی کہی ہے اور اگر اس کے مخالف ہو تو وہ بات‬
‫میں نے نہیں کہی۔"‬
‫شافعی‪ :‬یہ حدیث کسی بھی ایسے ثقہ شخص نے روایت نہیں کی جس نے کسققی ب ھی‬
‫چھوٹے یا بڑے معاملے میں حدیث بیان کی ہو۔ یہ حدیث کسی بھی معققاملے میققں ثبققوت‬
‫نہیں ہو سکتی کیونکہ یہ ایک منقطع روایت ہے جس کا راوی نامعلوم ہے۔ ہم اس قسققم‬
‫کی کسی روایت کو قبول نہیں کر سکتے۔‬
‫سائل‪ :‬کیا نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے آپ کی رائے کقے حققق میققں کققوئی حققدیث‬
‫مروی ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬جی ہاں۔‬
‫سفیان نے سالم ابو النضر سے‪ ،‬انہوں نے عبید اللہ بن ابی رافع سے‪ ،‬اور انہوں نے اپنے‬
‫والد سے روایت کی کہ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪ :‬میں تم سے کسی کققو‬
‫اس طرح سے نہ پاؤں کہ وہ اپنے پلنگ پر تکیہ لگائے )متکبرانہ انققداز میققں( بیٹ ھا ہو اور‬
‫جب اس کے سامنے میرے احکام میں سے کوئی حکم پیش کیا جائے جققس میققں میققں‬
‫نے کسی چیز کے بارے میں حکم دیا ہو یا کسی چیز سے روکا ہو تو وہ ک ہہ دے کقہ میقں‬
‫نہیں جانتا‪ ،‬ہمیں یہ کتاب اللہ میں نہیں مل‪ ،‬اس لئے ہم اس کققی پیققروی ن قہ کریققں گ قے۔‬
‫)ترمذی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬ابن ماجہ(‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے لوگوں پر لزم کر دیا کہ وہ کبھی بھی آپ کے‬
‫حکم کو مسترد نہ کریں کیونکہ اللہ تعالی نے آپ کے حکم کی اتبققاع ان پققر فققرض کققی‬
‫ہے۔‬
‫سائل‪ :‬کیا آپ ایسی مثالیں پیش کریں گے جن پر اہل علم یا کم از کم ان کی اکثریت‬
‫آپ کے ساتھ متفق ہے کہ کتاب اللہ کا حکم بظاہر عام تھا لیکن سنت نے وضققاحت کققی‬
‫کہ یہ حکم خاص ہے۔‬
‫شافعی‪ :‬جی ہاں‪ ،‬اس کتاب میں میں پہلے ہی یہ مثالیں بیان کر چکا ہوں۔‬
‫سائل‪ :‬برائے کرم اگر آپ ان کا اعادہ فرما دیں۔‬

‫‪123‬‬
‫شافعی‪ :‬اللہ تعالی کا ارشاد ہے‪:‬‬
‫ت اْل َِخ‬ ‫م وَب َن َققا ُ‬ ‫خققاَلت ُك ُ ْ‬ ‫م وَ َ‬ ‫مققات ُك ُ ْ‬ ‫م وَعَ ّ‬ ‫وات ُك ُ ْ‬ ‫خ َ‬‫م وَأ َ َ‬ ‫م وَب ََنات ُك ُ ْ‬ ‫مَهات ُك ُ ْ‬
‫حرمت عَل َيك ُ ُ‬
‫مأ ّ‬ ‫ْ ْ‬ ‫ُ ّ َ ْ‬
‫ت‬ ‫قا‬‫ق‬ ‫ه‬ ‫م‬ ‫خواتك ُم م قن الرضققاعَة وأ ُ‬ ‫خت وأ ُمهاتك ُم الّلِتي أ َرضعنك ُم وأ َ‬ ‫ُ‬ ‫ْ‬
‫ل‬ ‫ا‬ ‫ت‬
‫ِ َ ّ َ ُ‬ ‫ْ َ ْ َ ْ َ َ ُ ْ ِ ْ ّ َ‬ ‫َ‬ ‫ِ َ ّ َ ُ ْ‬ ‫ْ‬ ‫وَب ََنا ُ‬
‫ن‪،‬فَ قإ ِ ْ‬
‫ن‬ ‫م ب ِهِ ق ّ‬ ‫خل ْت ُ ْ‬‫م الّلِتي د َ َ‬ ‫سائ ِك ُ ْ‬ ‫ن نِ َ‬ ‫م ْ‬ ‫م ِ‬ ‫جورِك ُ ْ‬ ‫ح ُ‬ ‫م الّلِتي ِفي ُ‬ ‫م وََرَبائ ِب ُك ُ ْ‬ ‫سائ ِك ُ ْ‬ ‫نِ َ‬
‫َ‬ ‫َ‬
‫م‬ ‫صقَلب ِك ُ ْ‬ ‫نأ ْ‬ ‫مق ْ‬ ‫ن ِ‬ ‫ذي َ‬ ‫م ال ّق ِ‬‫ل أب َْنائ ِك ُ ْ‬ ‫حَلئ ِ ُ‬ ‫م‪،‬وَ َ‬ ‫ح عَل َي ْك ُ ْ‬ ‫جَنا َ‬‫ن فََل ُ‬ ‫م ب ِهِ ّ‬ ‫خل ْت ُ ْ‬ ‫كوُنوا د َ َ‬ ‫م تَ ُ‬ ‫لَ ْ‬
‫ُ‬ ‫َ‬
‫مققا۔‬ ‫حي ً‬ ‫فققوًرا َر ِ‬ ‫ن غَ ُ‬ ‫ه ك َققا َ‬ ‫ن الل ّق َ‬ ‫ف‪،‬إ ِ ّ‬ ‫س قل َ َ‬ ‫مققا قَقد ْ َ‬ ‫ن إ ِّل َ‬ ‫ِ‬ ‫خت َي ْق‬‫ن اْل ْ‬ ‫معُققوا ب َي ْق َ‬ ‫ج َ‬‫ن تَ ْ‬ ‫وَأ ْ‬
‫م‬‫كقق ْ‬ ‫ل لَ ُ‬ ‫ح ّ‬ ‫م‪،‬وَأ ُ ِ‬ ‫ب الل ّهِ عَل َي ْك ُ ْ‬ ‫م‪،‬ك َِتا َ‬ ‫مان ُك ُ ْ‬
‫َ‬
‫ت أي ْ َ‬ ‫مل َك َ ْ‬ ‫ما َ‬ ‫ساِء إ ِّل َ‬ ‫ن الن ّ َ‬ ‫م ْ‬ ‫ت ِ‬ ‫صَنا ُ‬ ‫ح َ‬ ‫م ْ‬‫َوال ْ ُ‬
‫ما وََراَء ذ َل ِك ُ ْ‬
‫م۔‬ ‫َ‬
‫حرام کی گئی ہیں تم پر تمہاری مائیں‪ ،‬بیٹیققاں‪ ،‬بہنیققں‪ ،‬پھوپھیققاں‪ ،‬خققالئیں‪ ،‬بھتیجیققاں‪،‬‬
‫بھانجیاں‪ ،‬رضاعی مقائیں‪ ،‬رضقاعی بہنیقں‪ ،‬بیویقوں کقی مقائیں‪ ،‬اور تم ہاری گقود میقں‬
‫پرورش پانے والی تمہاری سوتیلی بیٹیاں۔ اگر تم نے اپنی بیویوں سے خلوت کر لی ہے‬
‫تو سوتیلی بیٹی سے نکاح کرنا تمہارے لئے جائز نہیں ہاں اگر خلوت نہیں ہوئی تققو پ ھر‬
‫کوئی حرج نہیں۔‬
‫تمہارے سگے )صلبی( بیٹوں کی بیویوں )سے نکاح کرنققا( اور دو بہنققوں کققو ایققک سققاتھ‬
‫)نکاح میں( جمع کرنا بھی حرام ہے سوائے اس کے کہ جو کچھ پہلے ہو چکا کیققونکہ الل قہ‬
‫بخشنے وال مہربان ہے۔ دوسروں کے ساتھ بیاہی ہوئی خواتین ب ھی تققم پققر حققرام ہیققں‬
‫سوائے اس کے کہ جو )جنگ میں( کنیز بن کر تمہارے پاس آئیں۔ ی قہ الل قہ کققا قققانون ہے‬
‫جس کی پابندی کرنا تمہارے لئے لزم ہے۔ اس کے علوہ جتنی اور خواتین بھی ہیں )ان‬
‫سے نکاح کرنا( تمہارے لئے حلل ہے۔ )النساء ‪(24-4:23‬‬
‫اللہ تعالی نے یہاں ان خواتین کا ذکر کیا جن سے شققادی کرنققا حققرام ہے۔ اس کقے بعققد‬
‫م" یعنی "اس کے علوہ جتنی اور خواتین ب ھی ہیققں )ان‬‫ما وََراَء ذ َل ِك ُ ْ‬ ‫ل ل َك ُ ْ‬
‫م َ‬ ‫ارشاد فرمایا "وَأ ُ ِ‬
‫ح ّ‬
‫سے نکاح کرنا( تمہارے لئے حلل ہے"۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ارشاد فرمایققا‪:‬‬
‫"کوئی شخص بھی ایک ہی وقت میں ایک عورت اور اس کی پ ھوپھی سقے نکققاح نقہ کققرے اور اسققی‬
‫طرح ایک ہی وقت میں ایک عققورت اور اس کققی خققالہ سقے نکققاح ب ھی منققع ہے۔" )بخققاری‪ ،‬مسققلم‪،‬‬
‫ترمذی‪ ،‬نسائی‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬مالک( میں کسی ایسے عققالم کققو نہیققں جانتققا جققو اس بققات سقے‬
‫اختلف رکھتا ہو۔‬
‫اس میں دو باتیں واضح ہوتی ہیں۔ ایک تو یہ ک قہ سققنت رسققول صققلی اللقہ علی قہ و ٰال قہ‬
‫وسلم کبھی کتاب اللہ کے خلف نہیں ہو سکتی بلکہ یقہ اس ک قے خققاص اور عققام احکققام‬
‫کی وضاحت کرتی ہے۔ دوسری بات یہ ہے کہ اہل علم کے ہاں خبر واحد کو قبول کیا گیا‬
‫ہے۔ ہم اس حدیث کے بارے میں سوائے سققیدنا ابققوہریرہ رضققی الل قہ عن قہ ک قے کسققی اور‬
‫راوی سے واقف نہیں ہیں۔‬
‫سائل‪ :‬کیا آپ کے رائے میں یہ حدیث کتاب اللہ کے ظاہری حکم کے متضاد نہیں ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬نہیں‪ ،‬نہ تو یہ بلکہ کوئی بھی حدیث کتاب اللہ کے مخالف نہیں ہو سکتی۔‬
‫سائل‪ :‬تو پھر اس کا کیا مطلب ہے کہ اللہ تعالی نے فرمایا کہ " حرام کققی گئی ہیققں تققم پققر‬
‫تمہاری مائیں۔۔۔" یہ حرمتیں بیان کرنے کے بعد یہ فرما دیا کہ "اس کے علوہ جتنی اور خققواتین‬
‫بھی ہیں )ان سے نکاح کرنا( تمہارے لئے حلل ہے۔"‬
‫شافعی‪ :‬یہاں ان خواتین کے )شادی کے لئے( حرام ہونے کا ذکر ہے جققو ہر حققالت میققں‬
‫حرام ہیں جیسا کہ ماں‪ ،‬بیٹی‪ ،‬بہن‪ ،‬پھوپھی‪ ،‬بھتیجی‪ ،‬بھانجی۔ یہاں ان خققواتین کققا ذکققر‬
‫ہے جو نسب یا رضاعی تعلق کے باعث شادی کے لئے حرام کققر دی گئی ہیققں۔ اس کقے‬
‫بعد ان خواتین کا ذکر ہے جن کو ایک ہی نکاح میں جمع کرنا حرام ہے۔ اصل بات یہ ہے‬
‫کہ انفرادی طور پر ان میں سے ہر ایک سے نکاح درست ہے۔ جیسا کقہ ارشققاد ہے کقہ "‬

‫‪124‬‬
‫اس کے علوہ جتنی اور خواتین بھی ہیں )ان سے نکاح کرنا( تمہارے لئے حلل ہے۔" اس کا مطلققب‬
‫یہ ہے کہ یہ اس صورت میں حلل ہیں جس حال میں اللہ تعالی نے انہیں حلل کیا ہے۔‬
‫کیا آپ یہ نہیں دیکھتے کہ اس ارشاد "اس کے علوہ جتنی اور خواتین بھی ہیں )ان سے نکققاح‬
‫کرنا( تمہارے لئے حلل ہے۔" کا مطلب یہ بھی ہے کہ کوئی خاتون بغیر نکاح کے حلل تو نہیں‬
‫ہو سکتی اسی طرح چار بیویوں کے ہوتے ہوئے پانچویں سے نکققاح جققائز نہیققں اور ایققک‬
‫بہن کے ہوتے ہوئے دوسری سے نکاح جائز نہیں یا کوئی اور معاملہ جس سے منع کیا گیا‬
‫ہو۔‬
‫میں نے وضو سے متعلق اللہ تعالی کے لزم کردہ احکام کا ذکر کیا اور نبی صلی اللہ‬
‫علیہ و ٰالہ وسلم نے موزوں پر مسح فرمایا۔ اکثر اہل علم نے مسح کی اس اجققازت کققو‬
‫قبول فرمایا ہے۔‬
‫سائل‪ :‬کیا مسح قرآن کے کسی حکم کے خلف ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬سنت کسی حال میں بھی قرآن کے خلف نہیں ہو سکتی۔‬
‫سائل‪ :‬کیا آپ ا س کی وضاحت فرما دیں گے؟‬
‫شافعی‪ :‬اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا‪:‬‬
‫َ‬
‫حوا‬
‫سق ُ‬
‫م َ‬
‫ق َوا ْ‬ ‫م إ َِلقى ال ْ َ‬
‫مَراِفق ِ‬ ‫م وَأْيقدِي َك ُ ْ‬ ‫سُلوا وُ ُ‬
‫جوهَك ُ ْ‬ ‫صلةِ َفاغْ ِ‬ ‫م إ َِلى ال ّ‬ ‫ذا قُ ْ‬
‫مت ُ ْ‬ ‫إِ َ‬
‫ْ‬ ‫جل َك ُ ْ َ‬ ‫َ‬
‫ن۔‬‫م إ ِلى الك َعْب َي ْ ِ‬ ‫سك ُ ْ‬
‫م وَأْر ُ‬ ‫ب ُِرُءو ِ‬
‫جب تم نماز کے لئے اٹھو تو منہ اور ہاتھ کہنیوں تک دھو لو‪ ،‬سروں پر مسح کقر لقو اور‬
‫پاؤں ٹخنوں تک دھو لو۔ )المائدہ ‪(5:6‬‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے وضاحت فرما دی کہ اگر کسی شخص کا وضققو‬
‫ہو اور وہ اسے کوئی ایسی چیز لحق نہ ہو جس سے وضو دوبارہ کرنا لزم ہہہو تققو نمققاز‬
‫کی ادائیگی کے لئے یہ وضو اس پر فرض نہیں ہے۔ اسی طرح آپ نے ی قہ ب ھی وضققاحت‬
‫فرما دی کہ پاؤں دھونا صرف اسی کے لئے ضروری ہے جس نے کامل وضققو کرن قے ک قے‬
‫بعد موزے نہ پہن رکھے ہوں۔ )یعنی اگر وہ پورا وضو کر کے موزے پہن ل قے تققو پ ھر اگل قے‬
‫وضو میں اس کے لئے پاؤں دھونا ضروری نہیں ہے۔( اسی طرح نبی صلی اللہ علیہ و ٰالققہ‬
‫وسلم نے کچلی والے درندوں کے حرام ہونے کا ذکر فرمایا ہے جبکہ اللہ تعالی کا ارشققاد‬
‫ہے‪:‬‬
‫َ‬ ‫ما ُأو ِ‬ ‫َ‬
‫ة‬
‫مي ْت َق ً‬
‫ن َ‬‫كو َ‬ ‫ن يَ ُ‬ ‫ه إ ِّل أ ْ‬ ‫م ُ‬‫عم ٍ ي َط ْعَ ُ‬
‫طا ِ‬‫ما عََلى َ‬ ‫حّر ً‬ ‫م َ‬‫ي ُ‬‫ي إ ِل َ ّ‬‫ح َ‬ ‫جد ُ ِفي َ‬‫ل‪َ :‬ل أ ِ‬ ‫قُ ْ‬
‫ل ل ِغَي ْرِ الل ّهِ ب ِهِ۔‬ ‫ُ‬ ‫َ‬ ‫َ‬ ‫َ‬
‫قا أهِ ّ‬ ‫س ً‬ ‫س أو ْ ف ِ ْ‬
‫ج ٌ‬ ‫ر‪،‬فَإ ِن ّ ُ‬
‫ه رِ ْ‬ ‫زي ٍ‬
‫خن ِ‬ ‫م ِ‬ ‫ح َ‬‫حا أوْ ل َ ْ‬‫فو ً‬‫س ُ‬
‫م ْ‬ ‫ما َ‬‫أو ْ د َ ً‬
‫)اے نبی!( آپ کہیے‪ :‬میرے پاس جو وحی آئی ہے اس میں میں کوئی )کھانے کے قابققل(‬
‫ایسی چیز نہیں پاتا جو کسی کھانے والے پر حرام ہو سوائے اس کے کہ وہ مردار ہو‪ ،‬یققا‬
‫بہایا ہوا خون ہو‪ ،‬یقا خنزیققر کققا گوشققت ہو کقہ وہ ناپقاک ہے یقا )ذبققح کرنقے والقے کققی(‬
‫نافرمانی ہو کہ اس نے اسے اللہ کے علوہ کسی اور ک قے لئے ذبققح کققر لیققا ہو۔ )النعققام‬
‫‪(6:145‬‬
‫اس طرح اللہ تعالی نے حرام کھانوں کو بیان کر دیا ہے۔‬
‫سائل‪ :‬اس کا کیا مطلب ہے؟‬
‫شافعی‪ :‬اس کا مطلب یہ ہے کہ )اے نبی!( آپ کہیے کہ میرے پاس جو وحی آئی ہے میققں‬
‫کسی ایسی چیز کو حرام نہیں پاتا جو کہ تم لوگ کھاتے ہو سوائے اس کے کہ وہ مققردار‬
‫یا دوسری چیزیں ہو جن کا یہاں ذکر ہوا۔ جو کچھ تم کھانا چھوڑ رہے ہو یہ درست نہیققں‬

‫‪125‬‬
‫کیونکہ پاک چیزوں کو چھوڑنا نہیں چاہیے۔ جو حلل ہے وہ حرام نہیں ہو سققکتا جققب تققک‬
‫اللہ تعالی یا نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم اسے حرام نہ کریں۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے کہ‬
‫ث " یعنی "آپ ان پر پاک چیزوں کو حلل فرمائیں‬ ‫خَبائ ِ َ‬‫م ال ْ َ‬‫م عَل َي ْهِ ْ‬ ‫حّر ُ‬
‫ت وَي ُ َ‬‫م الط ّي َّبا ِ‬‫ل ل َهُ ْ‬ ‫ح ّ‬‫"وَي ُ ِ‬
‫اور ناپاک چیزوں کو حرام" )العراف ‪(7:157‬‬
‫َ‬
‫م الّرب َققا "‬ ‫ه ال ْب َي ْقعَ وَ َ‬
‫حقّر َ‬ ‫ل الل ّق ُ‬
‫حق ّ‬
‫میں نے اللہ تعالی کے اس ارشاد کا ذکر بھی کیققا کقہ "وَأ َ‬
‫َ‬ ‫ْ‬
‫وال َك ُ ْ‬
‫م‬ ‫یعنی " اللہ نے تجارت کو حلل قرار دیا ہے اور سود کو حرام۔" اور فرمایا " َل ت َقأك ُُلوا أ ْ‬
‫مق َ‬
‫َ‬
‫م " یعنققی "ایققک دوسققرے ک قے مققال باطققل‬ ‫من ْك ُ ْ‬
‫ض ِ‬
‫ن ت ََرا ٍ‬ ‫جاَرةً عَ ْ‬ ‫ن تِ َ‬‫كو َ‬‫ن تَ ُ‬‫ل إ ِّل أ ْ‬ ‫م ِبال َْباط ِ ِ‬‫ب َي ْن َك ُ ْ‬
‫طریقے سے مت کھاؤ سوائے اس کے کہ وہ تم ہاری مرضققی کققی بققاہمی تجققارت ہو۔" اس کے بعققد‬
‫رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے کچھ مخصققوص اقسققام ک قے سققودوں س قے منققع‬
‫فرما دیا جیسے سونے کے دیناروں کو چاندی کے دراہم کے بدلے ادھار بیچنققا شققامل ہے‬
‫اور اسی طرز کے دوسری ممنوع سودے۔ یہ مثال اور دوسری تمام مثققالیں کتققاب الل قہ‬
‫کے خلف نہیں ہیں۔‬
‫سائل‪ :‬آپ نے جو کچھ فرمایا برائے کرم اس کے جامعیت اور اختصار کے ساتھ بیان کر‬
‫دیجیے۔‬
‫شافعی‪ :‬اللہ کی کتاب میں یہ بیان کر دیا گیا ہے کہ اس نے اپنے رسقول صققلی اللقہ علیقہ‬
‫و ٰالہ وسلم کو اپنے احکام کی وضاحت کا مقام عطا فرمایا ہے اور اپنقے بنققدوں پققر آپ‬
‫َ‬
‫م الّرب َققا "‬‫حقّر َ‬ ‫ه ال ْب َي ْقعَ وَ َ‬
‫ل الل ّق ُ‬ ‫ح ّ‬‫کی اطاعت کو لزم کر دیا ہے۔ یہ جو ارشاد فرمایا کہ "وَأ َ‬
‫یعنی " اللہ نے تجارت کو حلل قرار دیا ہے اور سود کو حرام۔" اس کا مطلب یہ ہے کقہ اللقہ نقے‬
‫ہر اس تجارت کو حلل فرما دیا ہے جس سے اللہ نے اپنی کتاب یا اپنے نققبی کققی زبققان‬
‫م " یعنی‬ ‫ما وََراَء ذ َل ِك ُ ْ‬ ‫م َ‬‫ل ل َك ُ ْ‬
‫ح ّ‬‫سے منع نہیں فرمایا ہے۔ اسی طرح اللہ کے ارشاد کہ " وَأ ُ ِ‬
‫" اس کے علوہ جتنی اور خواتین بھی ہیں وہ تمہارے لئے حلل ہیں۔" سے مراد ی قہ ہے کقہ اللقہ نقے‬
‫اپنی کتاب میں جن خواتین کو نکاح یا ملکیت کے تعلق سے حلل کیا ہے‪ ،‬وہ حلل ہیققں‬
‫نہ کہ ہر عورت سے جنسی تعلقات قائم کرنا جائز ہے۔ یہ واضح عربی کلم کققی مثققالیں‬
‫ہیں۔‬
‫ایسے شخص کے لئے جو کتاب و سنت کے تعلق سے آگاہ نہیں ہے‪ ،‬اگر سنت کو ترک‬
‫کرنا درست ہوتا تو ہم موزوں پر مسح کو ترک کر دیتے‪ ،‬ہر اس کام کو حلل سمجھتے‬
‫جسے "تجارت" کہا جاتا ہے‪ ،‬ایک خاتون کے ساتھ ساتھ اس کی پھوپھی یا خالہ کو نکققاح‬
‫میں جمع کر لینے کو بھی درست سمجھتے‪ ،‬اور کچلقی والقے درنقدوں وغیقرہ کقو کھانقا‬
‫جائز سمجھتے۔ یہ رائے رکھنا بھی درست ہو جاتا کہ "چوتھائی دینار سے کم مالیت کققی‬
‫َ‬
‫ة َفاقْط َُعوا أْيققدِي َهُ َ‬
‫ما" یعنققی‬ ‫سارِقَ ُ‬
‫سارِقُ َوال ّ‬
‫چوری پر ہاتھ نہ کاٹے جائیں گے" کا حکم "َوال ّ‬
‫"چور مرد و عورت کے ہاتھ کاٹ دو" کی آیت کے نزول سے پہلے کا ہے۔ جققس کققام پققر ب ھی‬
‫لفظ "چوری" کا اطلق ہوتا‪ ،‬اس کام کے کرنے ہاتھ کاٹ دیے جاتے۔‬
‫یہ رائے رکھنا بھی درست ہو جاتا کہ شادی شدہ زانیوں کو رجققم کرنقے کققا عمققل جققو‬
‫دوا ك ُق ّ‬
‫ل‬ ‫ة َوالّزان ِققي َفا ْ‬
‫جل ِق ُ‬ ‫نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے منسوب ہے اس آیققت کقہ "الّزان ِي َق ُ‬
‫ة" یعنی "زانی مرد و عورت میں سے ہر ایک کققو سققو کققوڑے مققارو" سے‬ ‫جل ْد َ ٍ‬
‫ة َ‬‫مائ َ َ‬ ‫ما ِ‬ ‫من ْهُ َ‬
‫حدٍ ِ‬‫َوا ِ‬
‫پہلے کا ہے۔ اب کنوارے اور شادی شدہ بدکاروں کو کوڑے ہی مارے جائیں گقے اور انہیققں‬
‫رجم نہ کیا جائے گا۔ اسی طرح یہ رائے رکھنا بھی درست ہو جاتا ک قہ رسققول الل قہ صققلی‬
‫اللہ علیہ وسلم نے تجارتی سودوں کی جن اقسام سے منع فرمایا ہے وہ حکم اس آیققت‬
‫َ‬
‫م الّرَبا " یعنی " اللہ نے تجارت کو حلل قرار دیا ہے اور سود کو حققرام۔"‬ ‫حّر َ‬ ‫ه ال ْب َي ْعَ وَ َ‬
‫ل الل ّ ُ‬ ‫ح ّ‬
‫"وَأ َ‬
‫سے پہلے کا ہے۔ جب سے آیت نازل ہوئی تو یہ تمام تجارتی سودے حلل ہو گئے۔‬

‫‪126‬‬
‫جہاں تک سود کا معاملہ ہے تو یہ بھی ہو سکتا تھا ک قہ ایققک شققخص ن قے دوسققرے س قے‬
‫قرض وصول کرنا ہو اور وہ اسے کہے‪" ،‬قرض ادا کرو گے یا سود دو گے؟" اس طریقے‬
‫سے وہ قرض کو موخر کر دے اور سود کے ذریعے اپنے مال میققں اضققافہ کققر لقے۔ اسققی‬
‫طرز کی بہت سے مثالیں موجود ہیں۔ جو شخص یہ رائے رکھتا ہے )کہ "سنت کو قرآنی‬
‫حکم سے اس طرح منسوخ کیا جا سکتا ہے کقہ کققوئی ناسققخ سققنت موجققود نقہ ہو"( وہ‬
‫سنت کے بہت سے احکام کو منسوخ قرار دے دے گا۔ حقیقت یقہ ہے کقہ یقہ رائے سققوائے‬
‫کہنے والے کی لعلمی کے سوا اور کچھ نہیں ہے۔‬
‫سائل‪ :‬آپ نے صحیح فرمایا۔‬
‫شافعی‪ :‬سنت رسول صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے بارے میں میں نے جو کچھ بیان کیققا‪،‬‬
‫جو اس سے اختلف رکھتا ہے وہ سنت )کے مقام( سے اپنی لعلمی کققو اپنققی رائے کقی‬
‫غلطی کے ساتھ اکٹھا کر دیتا ہے )یعنی لعلمی کے باعث غلطی کر بیٹھتا ہے۔(‬
‫سائل‪ :‬کچھ ایسی سنتوں کو بیان کیجیے جو کسققی اور سققنت س قے منسققوخ ہو چکققی‬
‫ہوں۔‬
‫شافعی‪ :‬ناسخ اور منسوخ سنتوں کو )اس کتاب میں( اپنے اپنے مقام پر بیققان کققر دیققا‬
‫گیا ہے۔ ان کی تکرار سے کتاب بہت طویل ہو جائے گی۔‬
‫سائل‪ :‬ان میں سے بعض مثالیں بھی کافی رہیں گی اگر آپ انہیققں اختصققار س قے بیققان‬
‫کر دیں۔‬
‫شافعی‪) :‬حدیث میں آتا ہے۔(‬
‫مالک نے عبداللہ بن ابی بکر بن محمد بن عمرو بن حقزم سقے‪ ،‬ان ہوں نقے عبققداللہ بققن‬
‫واقد سے اور انہوں نے عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت کی ک قہ رسققول الل قہ‬
‫صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے قربانی کے گوشت کققو تیققن دن کقے بعققد ک ھانے سقے منققع‬
‫فرمایا۔ عبداللہ بن ابی بکر کہتے ہیں کہ میں نے یہ حدیث عمرۃ )بنققت عبققدالرح ٰمن( کقے‬
‫سامنے بیان کی تو انہوں نے کہا‪ ،‬انہوں نے درست کہا کیونکہ میں نے سیدہ عائشہ رضی‬
‫اللہ عنہا کو کہتے سنا‪:‬‬
‫دیہات سے کچھ )غریب( لوگ نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کے زمانے میں قربققانی ک قے‬
‫دن آئے تو نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے ارشاد فرمایا‪)" ،‬قربققانی ک قے گوشققت کققو(‬
‫تین دن تک تم رکھ سکتے ہو اس کے بعد جو باقی بچے اسے )ان غریبوں کو( صدقہ کر‬
‫دو۔"‬
‫اس کے کچھ عرصے بعد آپ سے عرض کیا گیا‪" ،‬یا رسققول اللقہ! لققوگ اپنققی قربققانیوں‬
‫سے فائدہ اٹھاتے ہیں۔ یہ لوگ قربانی کے جانوروں کی چربقی اکٹ ھی کقر لیتقے ہیقں اور‬
‫اس کی کھال سے مشکیزے بنا لیتے ہیں۔" آپ نے فرمایا‪" ،‬پھر کیققا ہوا" )آپ ن قے کچ قھ‬
‫اسی طرح ارشاد فرمایا(‬
‫انہوں نے عرض کیا‪" ،‬یا رسول اللہ! آپ نے تو تیققن دن س قے زیققادہ قربققانی کققا گوشققت‬
‫رکھنے سے منع فرمایا تھا۔" رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسققلم نقے ارشقاد فرمایققا‪" :‬‬
‫میں نے تو ایسا ان )غریب دیہاتیوں( کی وجہ سے کہا تھا جو قربققانی ک قے دن آئے ت ھے۔‬
‫)اب چونکہ ایسی صورتحال نہیں ہے اس لئے( تم چاہو تو اس گوشت کققو ک ھاؤ‪ ،‬چققاہے‬
‫صدقہ کرو اور چاہے محفوظ کر لو۔ )مسلم‪ ،‬ابو داؤد‪ ،‬مالک(‬
‫ہمیں ابن عینیہ نے بتایا کہ انہوں نے زہری سے اور انہوں نے ابن ازھر کے آزاد کققردہ غلم‬
‫ابو عبید کو کہتے سنا‪ :‬ہم علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ کقے سقاتھ عیقد گقزاری اور‬
‫آپ کو یہ کہتے ہوئے سنا‪" ،‬تم میں سے کوئی بھی تین دن کے بعد قربانی کا گوشت نققہ‬
‫کھائے۔"‬

‫‪127‬‬
‫ہمیں ایک قابل اعتماد راوی نے بتایا کہ انہوں نے روایت کی معمر سے‪ ،‬انہوں نے زہہہری‬
‫سے‪ ،‬انہوں نے ابن ازھر کے آزاد کردہ غلم ابو عبید سے اور انہوں نے علققی رضققی الل قہ‬
‫عنہ سے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم نے فرمایا‪" :‬تم سے کققوئی تیققن دن کقے‬
‫بعد قربانی کا گوشت نہ کھائے۔" )مسلم‪ ،‬نسائی‪ ،‬احمد‪ ،‬شافعی(‬
‫ابن عینیہ نے ابراہیم بن میسرہ سے اور انہوں نے انققس بققن مالققک رضققی اللقہ عنقہ سقے‬
‫روایت کی۔ آپ نے فرمایا‪" :‬ہم اپنی قربانیوں کو ماشاءاللہ ذبح کرتے اور پھر اس کققے‬
‫باقی گوشت میں سے اضافی گوشت کو لے کر بصرہ تققک کققا سققفر کققر لیتقے۔ )یعنققی‬
‫گوشت کو طویل مدت کے لئے محفوظ کر لیا جاتا("‬
‫ان احادیث میں کئی معنی اکٹھے ہیں۔ سیدنا علی رضی اللہ عنہ کی نبی صلی اللہ علیہ‬
‫و ٰالہ وسلم سے روایت کردہ حدیث کہ "تین دن سے زیادہ قربانی کے گوشت کو محفققوظ رکھنققا‬
‫منع ہے" اور عبداللہ بن واقد رحمۃ اللہ علیہ کی حدیث دونققوں ایققک دوسققرے ک قے موافققق‬
‫ہیں۔ اس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ علی رضی اللہ عنہ نے نبی صلی اللہ علی قہ و ٰال قہ وسققلم‬
‫سے اس منع کرنے کے حکم کو سنا تھا۔ ممانعت کا یہی حکم عبداللہ بن واقد تک ب ھی‬
‫پہنچا۔ اس کے بعد اس حکم سے رخصت )یعنی اب گوشت تین دن سے زیادہ محفوظ کیققا جققا‬
‫سکتا ہے( نہ تو علی رضی اللہ عنہ تقک پہنچققی اور نقہ ہی عبقداللہ بقن واقققد تقک۔ اگقر ان‬
‫دونوں تک یہ اجازت پہنچ جاتی تو وہ اس ممانعت کو بیان نہ کرتے جبکہ ممققانعت کققا ی قہ‬
‫حکم اب منسوخ ہے۔ ان دونوں نے اجازت کے حکم کو ترک کر دیققا حققالنکہ ی ہی ناسققخ‬
‫حکم ہے اور ممانعت منسوخ ہو چکی۔ ایک منسوخ حکم سننے والے کو ناسخ حکم کققو‬
‫جاننے سے مستغنی تو نہیں کرتا۔‬
‫نوٹ‪ :‬امام شافعی علیہ الرحمۃ کے نزدیک تین دن سے زائد قربانی کے گوشت کققو محفققوظ کرنقے کققا‬
‫حکم منسوخ ہے۔ دیگر ائمہ کے نزدیک یہ حکم اب بھی باقی ہے اگر ویسی ہی صورتحال پیدا ہو جققائے۔‬
‫اگر کسی مقام پر قحط زدہ لوگ موجود ہوں تو زیادہ مناسب یہی ہو گققا کقہ قربققانی کقے گوشققت کققو‬
‫طویل عرصے تک محفوظ کرنے کی بجائے جلد از جلد ان لوگوں کی ضرورت کو پققورا کرن قے کقے لئے‬
‫انہیں دے دیا جائے۔‬

‫اسی طرح سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ کے اس ارشاد میں کہ "ہم لوگ قربققانی‬
‫کے محفوظ شدہ گوشت کو بصرہ تک لے جایا کرتے تھے" یہ احتمال ہے کہ انس رضی اللہ عنہ نے‬
‫اجازت کے حکم کو تو سن لیا لیکن اس سے پہلے کقی ممقانعت کقے حکققم کقو نقہ سقن‬
‫سکے۔ اس وجہ سے انہوں نے رخصت سے تو فائدہ اٹھایا۔ آپ نے یا تو ممانعت کے حکم‬
‫کو سنا ہی نہیں یا پھر ممققانعت اور اجققازت دونققوں کقے حکققم کققو سققن لیققا اور چققونکہ‬
‫ممانعت کا حکم منسوخ تھا اس وجہ سقے اس کققا ذکققر نہیققں کیققا۔ ی ہی وجقہ ہے کقہ ان‬
‫دونوں راویوں نے جو کچھ جانتے تھے روایت کیا جو )بظاہر( ایک دوسققرے س قے مختلققف‬
‫ہے۔‬
‫ہر وہ شخص جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم سے کققوئی بققات سققنے‪ ،‬اس پققر‬
‫لزم ہے کہ جو کچھ اس نے سنا اسے دوسروں تک پہنچائے تاکہ وہ اسے جان لیں۔‬
‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا نے نے نبی صلی اللہ علیہ و ٰالہ وسلم کقی جققو حققدیث بیقان‬
‫فرمائی ہے کہ آپ نے پہلے تو تین دن سے زیادہ قربانی کے گوشت کققو اکٹ ھا کرنقے سقے‬
‫منع فرمایا پھر اس کے بعد اس کی اجازت دے دی۔ انہوں نے یہ بھی بتا دیققا کقہ تیققن دن‬
‫سے زیادہ گوشت کو اکٹھا کرنے کی ممانعت دراصل ان غریب دی ہاتیوں کقی وجقہ سقے‬
‫تھی۔ یہ حدیث مکمل بات بیان کرتی ہے جس میں پورے واقعے کو شروع سے آخر تققک‬
‫بیان کیا گیا ہے اور منع کرنے اور بعد میں اجازت دے دینے کی وجہ بھی بتا دی گئی ہے۔‬
‫جو شخص بھی اس حدیث کو جانتا ہو اس پر لزم ہے کہ وہ اب اسی پر عمل کرے۔‬

‫‪128‬‬
‫نوٹ‪ :‬احادیث میں یہ معاملہ ہو جاتا ہے کہ ہر راوی اپنے انداز میں بات کرتا ہے۔ کوئی پوری بات منتقل‬
‫کر دیتا ہے اور کوئی بات کا ایک حصہ بتانے پر اکتفا کرتا ہے۔ انسققان کققی یقہ نفسققیات ہوتی ہے ک قہ وہ‬
‫کسی بھی واقعے کے ہر پہلو کو جزوی تفصیلت کی حد تک یاد نہیں رکھتا۔ انسان کی یہ فطرت ہے کہ‬
‫وہ کسی بھی واقعے کو اپنے خیالت‪ ،‬نظریات‪ ،‬دلچسپیوں اور تعصبات کی عینک سے دیکھتا ہے۔‬
‫مثال کے طور پر اگر کسی جگہ کوئی قتل کا واقعہ ہو جائے تو ہم دیکھتے ہیں کہ ایک گواہ تو پققوری‬
‫تفصیل سے قاتل کا حلیہ بتا دیتا ہے لیکن اس کے قتل کرنے کے انداز کو زیادہ تفصققیل سقے بیققان نہیققں‬
‫کر پاتا کیونکہ اس طریقے میں اس کی دلچسپی نہیں ہوتی اور وہ اسے مناسب حد تک نوٹ نہیققں کققر‬
‫پایا ہوتا ۔ اس کے برعکس دوسرا گواہ قاتل کے حلیے کو تو زیادہ تفصققیل سقے نققوٹ نہیققں کرتققا لیکققن‬
‫قتل کرنے کے انداز کو بڑے واضح انداز میں بیان کر دیتا ہے کیونکہ اس کی دلچسپی اسی میققں ہوتی‬
‫ہے۔ اسی طریقے سے اگر اس واقعے کو کوئی ایسا شقخص بھ ہی دیکقھ رہ ہا ہ ہو جواسقلحے میقں بققڑی‬
‫دلچسپی رکھتا ہو تو وہ باقی چیزوں کی نسبت آلہ قتل کی جزئیات کو بڑی تفصیل س قے بیققان کققردے‬
‫گا۔ ایسا بھی ممکن ہے کہ کسی شخص نے قاتل کو پہچان لیا ہو لیکن وہ کسی ذاتققی مفققاد یققا خققوف‬
‫کی وجہ سے اس کے بارے میں غلط معلومات فراہم کر دے۔ یہی وجہ ہے کقہ ایقک ہی واقعقے کقو بیقان‬
‫کرنے والوں میں تفصیلت کے بارے میں کچھ نہ کچھ اختلف رونما ہو ہی جاتا ہے۔‬
‫ایک ہی موضوع سے وارد تمام روایات کو اکٹھا کر کے دیکھنے سے ی قہ مسققئلہ حققل ہو جاتققا ہے اور‬
‫انسان درست معلومات تک پہنچ جاتا ہے۔ زیر بحث روایت میں سیدہ عائشہ رضی اللقہ عن ہا کققی بیققان‬
‫کردہ روایت دوسری تمام روایات کی نہ صرف تطبیق کر دیققتی ہے بلکقہ صققورتحال کققو اچ ھی طققرح‬
‫واضح کر دیتی ہے۔‬

‫سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کی یہ حدیث‪ ،‬سنت میں موجود ناسخ و منسوخ کی سب‬
‫سے واضح مثال ہے۔ اس سے یہ بھی معلوم ہوتققا ہے کقہ بعققض اوقققات ایققک حققدیث کققو‬
‫جزوی طور پر محفوظ کر لیا جاتا ہے۔ بعض لوگ بات کے پہلے حصے کققو یققاد کققر لیت قے‬
‫ہیں اور دوسرے حصے کو محفوظ کرنے کا اہتمام نہیں کر پاتے اور بعض لققوگ دوسققرے‬
‫حصے کو یاد کر لیتے ہیں اور پہلے حصے کو محفققوظ نہیققں کرتقے۔ اس طققرح ہر کققوئی‬
‫اسی بات پر عمل کرتا ہے جو اس نے یاد کر لی ہوتی ہے۔‬
‫بعد میں دی گئی اجازت کہ قربانی کے گوشت کو محفوظ کققر لیققا جققائے یققا ک ھا لیققا‬
‫جائے یا صدقہ کر دیا جائے‪ ،‬یہ ایک معنی کو مختلف صورتحال میں اختیار کققر لین قے ک قے‬
‫مترادف ہے۔ جب غریب دیہاتی شہر میں آ گئے تو قربانی کے گوشت کققو تیققن دن س قے‬
‫زیادہ محفوظ رکھنے سے منع کر دیا گیا۔ جب یہ لوگ چلے گئے تققو اب اجققازت مققل گئی‬
‫کہ چاہے گوشت کو کھایا جائے‪ ،‬سفر میں ساتھ رکھ لیا جائے‪