You are on page 1of 3

‫عز وج ّل فإن فقد اإلنسان إحدى هذه الحواس‬‫الحواس الخمس هي نعمة من هللا ّ‬

‫يصبح لديه عجز وساقوم بتعريف الحواس الخمس ‪ ،‬وتعتبر الحواس الخمس مصدرا ً‬
‫مهما ً إلدراك لدى جميع الكائنات الحية‪ ،‬كما أنّها تعتبر عنصر مهم لمعرفة كل ما‬
‫أن الحواس‬‫يحدث وكيفية حدوثه والشعور به واإلحساس به واإلدراك به أيضاً‪ ،‬كما ّ‬
‫الخمسة بكاملها مهمة كما أنّنا نستخدمها بكل شيء وترتبط بكل شيء في حياتنا من‬
‫تواصل مع اآلخرين ومن البحث والكشف والعلم والتعرف على ماهية األمور‪ ،‬ولكل‬
‫حاسة وظيفة خاصة و سوف ابحث بها فی السطور التاليۃ۔‬

‫حواس خمسہ‪ :‬يہ هللا عز وجل کی نعمت هيں۔ اگر انسان کسی ايک حس سے بهی‬
‫محروم ہو تو محتاج ہو جاتا ہے۔ اب ميں پانچوں حسوں کی تعريف کروں گی۔ يہ‬
‫پانچ حسيں تمام جانداروں ميں آگاہی حاصل کرنے کا اہم ذريعہ ہيں۔ يہ ہمارے ارد‬
‫گرد جو واقع ہوتا ہے‪ ،‬اس کے اور اس کی کيفيت کے بارے ميں معلومات کا‬
‫ايک ذريعہ ہيں۔ يہ پانچ حسيں تمام ہی بہت اہم ہيں کيونکہ ان کے ہر چيز ميں ہم‬
‫ان سے مدد ليتے ہيں اور جو بهی چيز ہماری ذندگی ميں ہے دوسروں سے‬
‫رابطے سے لے کر تحقيق‪ ،‬ايجادات‪ ،‬سائينس تک سب سے ان کا تعلق ہے۔ ہر‬
‫حس کا ايک خاص کام ہے۔ ان کے بارے ميں ميں آگے بحث کروں گی۔‬
‫البصر‪:‬‬
‫البصر إحدى الحواس الخمس و هي قدرة الدماغ عن طريق العين على تفسير‬
‫الصورة المنظور اليها فالعين ترى األشياء لتميز األلوان واألشكال وتكشف النور‬
‫‪.‬عن الظالم۔‬

‫بصارت‪:‬‬
‫بصارت ديکهنے کی صفت کو کہتے هيں۔ يہ دماغ کا آنکه کے ذريعے چيزوں‬
‫کو ديکهنے کی صالحيت کا نام ہے۔ چنانچہ آنکه چيزوں کو ديکهتی ہے تاکہ ان‬
‫کے رنگوں‪ ،‬اور شکلوں ميں فرق کرسکے۔‬

‫السمع‪:‬‬
‫السمع احدى الحواس الخمس و هي قدرة األذن على التقاط ترددات الموجات‬
‫الصوتية المنتقله عبر الهواء وإدراكها‪ ،‬فاألذن تميز بين االصوات المختلفة المحيطة‬
‫باإلنسان من حيوانات وآالت وغيرها۔‬
‫سماعت‪:‬‬

‫سماعت حواس خمسہ ميں سے ايک حس ہے اور يہ کان کا آواز کی موجوں کو‬ ‫جو کہ ہوا کے ذريعے منتقل ہوتی ہيں محسوس کرنے کا نام ہے۔ کان مختلف‬ ‫آوازوں ميں فرق کرتا ہے جو کہ انسان کو گهيرے ہوے ہيں جيسے جانوروں اور‬ ‫آالت وغيره کی آوازيں۔‬ ‫الشم‪:‬‬ ‫الشم إحدى الحواس الخمس و هي قدرة األنف على تمييز الروائح المتنوعة ومع‬ ‫مرور الهواء داخل االنف يثير مستقبالت الشم‪ ،‬م ّما يحدث تفاعل كيميائي معين يصل‬ ‫للدماغ الذي بدوره يحلل الرائحة وبعد ذلك يميز اإلنسان بين الروائح الطيبة‬ ‫والخبيث۔‬ ‫سونگھنا‪:‬‬ ‫سونگھنا حواس خمسہ ميں سے ہے اور يہ ناک کا ايک بو کو دوسری سے فرق‬ ‫کرنے کی قدرت کا نام ہے۔ ہوا ناک ميں داخل ہو کر سونگهنے کے ريسيور‬ ‫کوحرکت ديتا ہے‪ ،‬اور وہاں خاص کيميائ ردعمل کرتا ہے جو دماغ کو پہنچتا‬ ‫ہے جو کہ پهر اس بو کو پرکهتا ہے۔ اس کے بعد انسان اچهی اور بری بو ميں‬ ‫فرق کرتا ہے۔‬ ‫التذوق‪:‬‬ ‫التذوق احدى الحواس الخمس وهي قدرة اللسان على تمييز الطعم والذوق للمواد‬ ‫المختلفة‪ ،‬والتمييز بين األطعمة ليميّز الطعم الحلو من المر۔‬ ‫چکھنے کی حس‪:‬‬ ‫يہ حواس خمسہ ميں سے ايک حس ہے۔ اور يہ زبان کا مختلف چيزوں کے‬ ‫ذائقوں ميں تميز کرنے کی قدرت کا نام ہے۔ اور ذائيقون ميں تميز کرنے سے‬ ‫ميٹهے اور کڑوے ذائقوں ميں فرق ہوتا ہے۔‬ ‫اللمس‪:‬‬ ‫اللمس ؐايضا إحدى الحواس الخمس وهي قدرة أطراف اإلنسان على تمييز السمات‬ ‫الخاصة باألشياء والتعرف على خصائصها‪ ،‬فبلمس اليد لجسم نميز بين السخن‬ ‫والبرد والصفات األخرى لألجسام۔‬ ‫لمس‪:‬‬ ‫لمس بهی حواس خمسہ ميں سے ايک حس ہے۔ اور يہ انسان کے اعضاء کا‬ ‫چيزوں کی عالمات اور ان کی خصوصيات کو جاننے کی قدرت کا نام ہے۔ ہاته‬ .

‫سے کسی جسم کو چهو کر ہم گرمائش‪ ،‬ٹهنڈک اور ديگر صفات ميں فرق کرتے‬ ‫ہيں۔‬ .