‫تنگ آچکے ہيں کشمکش زندگی سے ہم‬

‫ٹھکرا نہ ديں جہاں کو کہيں بے دلی سے ہم‬

‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ردعمل‬
‫چند کلياں نشاط کی چن کر‬
‫محو ياس رہتا ہوں‬
‫مدتوں‬
‫ِ‬
‫تيرا ملنا خوشی کی بات سہی‬
‫تجھ سے مل کر اداس رہتا ہوں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ايک منظر‬
‫افق کے دريچے سے کرنوں نے جھانکا‬
‫فضا تن گئی راستے مسکرائے‬
‫سمٹنے لگی نرم کہرے کی چادر!‬
‫جواں شاخساروں نے گھونگھٹ اٹھائے‬
‫پرندوں کی آواز سے کھيت چونکے‬
‫پراسرار َلے ميں رہٹ گنگنائے‬
‫حسيں شبنم آلود پگدنڈيوں سے‬
‫لٹنے لگے سبز پيﮍوں کےسائے‬
‫وه دور ايک ٹيلے پہ آنچل سا جھلکا‬
‫تصور ميں الکھوں ديئے جھلمالئے‬

‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ايک واقعہ‬
‫اندھياری رات کے آنگن ميں يہ صبح کے قدموں کی آہٹ‬
‫يہ بھيگی بھيگی سرد ہوا يہ ہلکی ہلکی دھندالہٹ‬
‫گاڑی ميں ہوں تنہا محو سفر اور نيند نہيں ہے آنکھوں ميں‬
‫بھولے بسرے ارمانوں کے خوابوں کی زميں ہے آنکھوں ميں‬
‫اگلے دن ہاتھ ہالتے ہيں بچھلی پيتيں ياد آتی ہيں‬
‫گم گشتہ خوشياں آنکھوں ميں آنسو بن کر لہراتی ہيں‬
‫سينے کے ويراں گوشوں ميں ايک ٹھيس سی کروٹ ليتی ہے‬
‫ناکام امنگيں روتی ہيں‪ ،‬اميد سہارے ديتی ہے‬
‫وه راہيں ذہن ميں گھومتی ہيں جن راہوں سے آج آيا ہوں‬
‫کتنی اميد سے پہنچا تھا‪ ،‬کتنی مايوسی اليا ہوں!‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫يکسوئی‬
‫عہد گم گشتہ کی تصوير دکھاتی کيوں ہو؟‬
‫ِ‬
‫ايک آوارۀ منزل کو ستاتی کيوں ہو؟‬
‫وه حسيں عہد جو شرمند ۀ ايفا نہ ہوا‬
‫اس حسی ں عہد کا مفہوم جتاتی کيوں ہو‬
‫زندگی شعلۂ بے باک بنا لو اپنی!‬
‫خاکستر خاموش بناتی کيوں ہو‬
‫خود کو‬
‫ِ‬
‫ميں تصو ّ◌ ف کے مراحل کا نہيں ہوں قائل‬
‫ميری تصوير پہ تم پھول چﮍھاتی کيوں ہو؟‬

‫کون کہتا ہے کہ آہيں ہيں مصائب کا عالج‬
‫جان کو اپنی عبث روگ لگاتی کيوں ہو؟‬
‫ايک سرکش سے محبت کی تمن ّ◌ ا رکھ کر‬
‫خود کو آئين کے پھندوں ميں پھنساتی کيوں ہو‬
‫ميں سمجھتا ہوں تقد ّ◌ س کو تمد ّ◌ ن کا فريب!‬
‫تم رسومات کو ايمان بناتی کيوں ہو؟‬
‫جب تمہيں مجھ سے زياده ہے زمانے کا خيال‬
‫پھر مری ياد ميں يوں اشک بہاتی کيوں ہو؟‬
‫تم ميں ہم ّ◌ ت ہے تو دنيا سے بغاوت کر دو‬
‫ورنہ ماں باپ جہاں کہتے ہيں شادی کر لو‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫محبت ترک کی ميں نے گريباں سی ليا ميں نے‬
‫زمانے اب تو خوش ہو زہر يہ بھی پی ليا ميں نے‬
‫ابھی زنده ہوں ليکن سوچتا رہتا ہوں خلوت ميں‬
‫کہ اب تک کس تمنا کے سہارے جی ليا ميں نے‬
‫انہيں ا پ نا نہيں سکتا‪ ،‬مگر اتنا بھی کيا کم ہے‬
‫کہ کچھ مدت حسی ں خوابوں ميں کھو کر جی ليا ميں نے‬
‫دامن دل چھوڑ دو بيکار اميدو!‬
‫بس اب تو‬
‫ِ‬
‫بہت دکھ سہہ ليے ميں نے بہت دن جی ليا ميں نے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬

‫شاہکار‬
‫مصور ميں ترا شہکار واپس کرنے آيا ہوں‬

‫اب ان رنگين رخساروں ميں تھوڑی زردياں بھردے‬
‫حجاب آلود نظروں ميں ذرا بے باکياں بھر دے‬
‫لبوں کی بھيگی بھيگی سلوٹوں کومضمحل کردے‬
‫سوز دل کر دے‬
‫نماياں رنگِ پيشانی پہ عکس‬
‫ِ‬
‫تبسم آفريں چہرے ميں کچھ سنجيده پن بھر دے‬
‫جواں سينے کی مخروطی اٹھانيں سرنگوں کر دے‬
‫گھنے بالوں کو کم کردے مگر رخشندگی دے دے‬
‫کرمذاق عاجزی دے دے‬
‫نظر سے تمکنت لے‬
‫ِ‬
‫مگر ہاں بنچ کے بدلے اسے صوفے پہ بٹھال دے‬
‫يہاں ميری بجائے اک چمکتی کار دکھال دے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫نذر کالج‬
‫ِ‬
‫لدھيانہ گورنمنٹ کالج ‪1943‬ء‬
‫ياران نيک نام‬
‫سرزمين پاک کے‬
‫اے‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫شاعر آواره کا سالم‬
‫باصد خلوص‬
‫ِ‬
‫اے وادئ جميل ميرے دل کی دھﮍکنيں‬
‫آداب کہہ رہی ہيں تری بارگاه ميں!‬
‫جنت خيال‬
‫تو آج بھی ہے ميرے ليے‬
‫ِ‬
‫ہيں تجھ ميں دفن ميری جوانی کے چار سال‬

‫کم ھ الئے ہيں يہاں پہ مری زندگی کے پھول‬
‫ان راستوں ميں دفن ہيں ميری خوشی کے پھول‬
‫تيری نوازشوں کو بھاليا نہ جائے گا‬
‫ماضی کا نقش دل سے مٹايا نہ جائے گا‬
‫تيری نشاط خيز فضائے جواں کی خير‬
‫گلہائے رنگ و بو کے حسی ں کارواں کی خير‬
‫دور خزاں ميںبھی تری کلياں کھلی رہيں‬
‫ِ‬
‫تا حشر يہ حسين فضائيں بسی رہيں!‬
‫ہم ايک خار تھے جو چمن سے نکل گئے‬
‫تھےحد وطن سے نکل گئے‬
‫ننگِ وطن‬
‫ِ‬
‫گائے ہيں اس فضا ميں وفا ؤ ں کے راگ بھی‬
‫نغمات آتشيں سے بکھيری ہے آگ بھی!‬
‫ِ‬
‫سرکش بنے ہيں گيت بغاوت کے گائے ہيں‬
‫برسوں نئے نظام کے نقشے بنائے ہيں‬
‫نشاط روح کا گايا ہے بارہا‬
‫نغمہ‬
‫ِ‬
‫گيتوں ميںآنسو ؤ ں کو چھپايا ہے بارہا‬
‫معصوميوں کے جرم ميں بدنام ہم ہوئے‬
‫مورد الزام بھی ہوئے‬
‫تيرے طفيل‬
‫ِ‬
‫اس سرزميں پہ آج ہم اک بار ہی سہی‬
‫دنيا ہمارے نام سے بيزار ہی سہی‬
‫ليکن ہم ان فضا ؤ ں کے پالے ہوئے تو ہيں‬
‫گرياں نہيںتو ياں سے نکالے ہوئے تو ہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬

‫غزل‬
‫ديکھا تو تھا يوں ہی کسی غفلت شعار نے‬
‫دل بے اختيار نے‬
‫ديوانہ کر ديا ِ‬
‫اے آرزو کے دھندلے خرابو؟ جواب دو‬
‫پھر کس کی ياد آئی تھی مجھ کو پکارنے‬
‫تجھ کو خبر نہيں‪ ،‬مگر اک ساده لوح کو‬
‫برباد کرديا ترے دو دن کے پيار نے‬
‫ترک محبت کی آرزو‬
‫ميں اور تم سے‬
‫ِ‬
‫غم روزگار نے‬
‫ديوانہ کر ديا ہے ِ‬
‫دل تباه ترا کيا خيال ہے‬
‫اب اے ِ‬
‫تھےکاکل گيتی سنوارنے‬
‫ہم تو چلے‬
‫ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫معذوری‬
‫خلوت و جلوت ميں تم مجھ سے ملی ہو بارہا‬
‫تم نے کيا ديکھا نہيں‪ ،‬ميں مسکرا سکتا نہيں‬
‫ميںکہ مايوسی مری فطرت ميں داخل ہو چکی‬
‫جبر بھی خود پر کروںتو گنگنا سکتا نہيں‬
‫مجھ ميں کيا ديکھا کہ تم الفت کا دم بھرنے لگيں‬
‫ميں تو خود اپنے بھی کوئی کام آسکتا نہيں‬
‫جنون عشق کے نغمے مگر‬
‫روح افزا ہيں‬
‫ِ‬
‫اب ميں ان گائے ہوئے گيتوں کو گاسکتا نہيں‬
‫ساز الفت کا سماں‬
‫ميں نے ديکھا ہے‬
‫ِ‬
‫شکست ِ‬

‫اب کسی تحريک پر بربط اٹھا سکتا نہيں‬
‫شدت احساس سے واقف تو ہے‬
‫دل تمہاری‬
‫ِ‬
‫اپنے احساسات سے دامن چھﮍا سکتا نہيں‬
‫تم مری ہو کر بھی بيگانہ ہی پا ؤ گی مجھے‬
‫ميں تمہارا ہو کے بھی تم ميں سما سکتا نہيں‬
‫خلوص دل سے بھی الفت کے گيت‬
‫گائے ہيں ميں نے‬
‫ِ‬
‫اب ريا کاری سے بھی چاہوں تو گا سکتا نہيں‬
‫شريک زندگی‬
‫کس طرح تم کو بنا لوں ميں‬
‫ِ‬
‫ميںتو اپنی زندگی کا بار اٹھا سکتا نہيں‬
‫ياس کی تاريکيوں ميں ڈوب جانے دو مجھے‬
‫شمع آرزو کی لو بﮍھا سکتا نہيں‬
‫اب ميں ِ‬

‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫پھر نہ کيجے مری گستاخ نگاہی کا گلہ‬
‫ديکھئيے آپ نے پھر پيار سے ديکھا مجھ کو‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫خانہ آبادی‬
‫ايک دوست کی شادی پر‬
‫ترانے گونج اٹھے ہيں فضا ميں شاديانوں کے‬
‫ہوا ہے عطر آگيں ذر ّ◌ ه ذر ّ◌ ه مسکراتا ہے‬

‫مگر دور ايک افسرده مکاں ميں سرد بستر پر‬
‫کوئی دل ہے کہ ہر آہٹ پہ يوں ہی چونک جاتا ہے‬
‫مری آنکھوں ميں آنسو آگئے ناديده آنکھوں کے‬
‫مرے دل ميں کوئی غمگين نغمہ سرسراتا ہے‬
‫حيات نو‬
‫عہد الفت‪ ،‬يہ‬
‫رسم‬
‫ِ‬
‫انقطاع ِ‬
‫يہ ِ‬
‫ِ‬
‫محبت رو رہی ہے اور تمدن مسکراتا ہے‬
‫يہ شادی خانہ آبادی ہو ميرے محترم بھائی‬
‫مبارک کہہ نہيں سکتا مرا دل کانپ جاتاہے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫سرزمين ياس‬
‫ِ‬
‫جينے سےدل بيزار ہے‬
‫ہر سانس اک آزار ہے‬
‫کتنی حزيں ہے زندگی‬
‫اندوه گيں ہے زندگی‬
‫احباب وطن‬
‫بزم‬
‫ِ‬
‫وه ِ‬
‫نوايان سخن‬
‫وه ہم‬
‫ِ‬
‫آتے ہيں جس دم ياد اب‬
‫کرتے ہيں دل ناشاد اب‬
‫گزری ہوئی رنگينياں‬
‫کھوئی ہوئی دلچسپياں‬
‫پہروں رالتی ہيں مجھے‬
‫اکثر ستاتی ہيں مجھے‬
‫وه زمزے وه چہچے‬

‫وه روح افزا قہقہے‬
‫جب دل کو موت آتی ہے‬
‫يوں بے حسی چھائی نہ تھی‬
‫کالج کی رنگيں وادياں‬
‫وه دلنشيں آبادياں‬
‫نازنينان وطن‬
‫وه‬
‫ِ‬
‫جبينان وطن‬
‫زہره‬
‫ِ‬
‫جن ميںسے اک رنگی ں قبا‬
‫آتش نفس‪ ،‬آتش نوا‬
‫کرکے محبت آشنا‬
‫رنگِ عقيدت آشنا‬
‫دل ناکام کو‬
‫ميرے ِ‬
‫خوں گشتۂ آالم کو‬
‫داغ جدائی دے گئی‬
‫ِ‬
‫ساری خدائی لے گئی‬
‫ُان ساعتوں کی ياد ميں‬
‫ُان راحتوں کی ياد ميں‬
‫مغموم سا رہتا ہوں ميں‬
‫غم کی کسک سہتا ہوں ميں‬
‫سنتا ہوں جب احباب سے‬
‫غم ای ّ◌ ام کے‬
‫قص ّ◌ ے ِ‬
‫بيتاب ہو جاتا ہوں ميں‬
‫آہوں ميں کھو جاتا ہوں ميں‬

‫پھر وه عزيز و اقربا‬
‫عہد وفا‬
‫جو توڑ کر ِ‬
‫احباب سے منہ موڑ کر‬
‫دنيا سے رشتہ جوڑ کر‬
‫حد افق سے اس طرف‬
‫ِ‬
‫رنگِ شفق سے ُاس طرف‬
‫اک واد ئ خاموش کی‬
‫عالم بے ہوش کی‬
‫اک ِ‬
‫گہرائيوں ميں سو گئے‬
‫تاريکيوں ميں کھو گئے‬
‫ان کا تصور ناگہاں‬
‫ليتا ہے دل ميں چٹکياں‬
‫اور خوں رالتا ہے مجھے‬
‫بے کل بناتا ہے مجھے‬
‫وه گا ؤ ں کی ہمجولياں‬
‫مفلوک دہقاں ز ادياں‬
‫فرط ياس سے‬
‫جو‬
‫دست ِ‬
‫ِ‬
‫يورشافالس سے‬
‫اور‬
‫ِ‬
‫عصمت لٹا کر ره گئيں‬
‫خود کو گنوا کر ره گئيں‬
‫غمگيںجوانی بن گئيں‬
‫رسوا کہانی بن گئيں‬
‫ُان سے کبھی گليوں ميں اب‬
‫ہوتا ہوں ميںدو چار جب‬

‫نظريں جھکا ليتا ہوں ميں‬
‫خود کو چھپا ليتا ہوںميں‬
‫کتنی حزيں ہے زندگی‬
‫اندوه گيں ہے زندگی‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫خودداريوں کے خون کو ارزاں نہ کر سکے‬
‫ہم اپنے جوہروں کو نماياں نہ کر سکے‬
‫خراب مے ترے غم تو بھال ديئے‬
‫ہو کر‬
‫ِ‬
‫غم حيات کا درماں نہ کر سکے‬
‫ليکن ِ‬
‫طلسم عہد محب ّ◌ ت کچھ اس طرح‬
‫ٹوٹا‬
‫ِ‬
‫پھر آرزو کی شمع فروزاں نہ کر سکے‬
‫ہر شے قريب آکے کشش اپنی کھو گئی‬
‫عالج شوق گريزاں نہ کرسکے‬
‫وه بھی‬
‫ِ‬
‫کس درجہ دل شکن تھے محبت کے حادثے‬
‫ہم زندگی ميں پھر کوئی ارماں نہ کرسکے‬
‫مايوسيوں نے چھين ليے دل کے ولولے‬
‫نشاط روح کا ساماں نہ کر سکے‬
‫وه بھی‬
‫ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫شکست‬
‫اپنے سينے سے لگائے ہوئے اميد کی الش‬
‫مدتوں زيست کو ناشاد کيا ہے ميں نے‬

‫تو نے تو ايک ہی صدمے سے کيا تھا دوچار‬
‫دل کو ہر طرح سےبرباد کيا ہے ميں نے‬
‫جب بھی راہوں ميں نظر آئے حريری ملبوس‬
‫سرد آہوں ميں تجھے ياد کيا ہے ميں نے‬
‫اور اب جب کہ مری روح کی پہنائی ميں‬
‫ايک سنسان سی مغموم گھٹا چھائی ہے‬
‫تو دمکتے ہوئے عارض کی شعائيں لے کر‬
‫گل شده شمعيں جالنے کو چلی آئی ہے‬
‫ميری محبوب‪ ،‬يہ ہنگامۂ تجديد وفا‬
‫ميری افسرده جوانی کے ليے راس نہيں‬
‫ميں نے جو پھول چنے تھے ترے قدموں کے ليے‬
‫ان کا دھندال سا تصور بھی ميرے پاس نہيں‬
‫ايک يخ بستہ ُاداسی ہے دل وجاں پہ محيط‬
‫اب مری روح ميں باقی ہے نہ اميد نہ جوش‬
‫ره گيا دب کے گراں بار سالسل کے تلے‬
‫ميری درمانده جوانی کی امنگوں کا خروش‬
‫ريگ زاروں ميں بگولوں کے سوا کچھ بھی نہيں‬
‫ابر گريزاں سے مجھے کيا لينا‬
‫سای ۀ ِ‬
‫بجھ چکے ہيں مرے سينے ميں محبت کے کنول‬
‫حسن پشيماں سے مجھے کيا لينا‬
‫اب ترے‬
‫ِ‬
‫تيرے عارض پہ يہ ڈھلکے ہوئے سيميں آنسو‬
‫ميری افسردگئ غم کا مداوا تو نہيں‬
‫پيام تجديد‬
‫تيری محبوب نگاہوں کا ِ‬

‫اک تالفی ہی سہی۔۔۔۔ميری تمنا تو نہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫کشمکش زندگی سے ہم‬
‫تنگ آ چکے ہيں‬
‫ِ‬
‫ٹھکرا نہ ديں جہاں کو کہيں بے دلی سے ہم‬
‫مايوسئ مآِل محبت نہ پوچھئے‬
‫اپنوں سے پيش آئے ہيں بيگانگی سے ہم‬
‫لو آج ہم نے توڑ ديا رشتۂ اميد‬
‫لو اب کبھی گلہ نہ کريں گے کسی سے ہم‬
‫ابھريں گے ايک بار ابھی دل کے ولولے‬
‫غم زندگی سے ہم‬
‫بار ِ‬
‫گودب گئے ہيں ِ‬
‫گر زندگی ميں مل گئے پھر اتفاق سے‬
‫پوچھيں گے اپنا حال تری بے بسی سے ہم‬
‫فريب مشيت کہ آج تک‬
‫ﷲ رے‬
‫ِ‬
‫دنيا کے ظلم سہتے رہے خامشی سے ہم‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫کسی کو اداس ديکھ کر‬
‫تمہيں اداس سا پاتا ہوں ميں کئی دن سے‬
‫نہ جانے کون سے صدمے اٹھا رہی ہوتم‬
‫وه شوخياں وه تبسم وه قہقہے نہ رہے‬
‫ہر ايک چيز کو حسرت سے ديکھتی ہو تم‬
‫چھپا چھپا کے خموشی ميں اپنی بے چينی‬
‫خود اپنے راز کی تشہير بن گئی ہو تم‬

‫ميری اميد اگر مٹ گئی تو مٹنے دو‬
‫اميد کيا ہے بس اک پيش و پس ہے کچھ بھی نہيں‬
‫ميری حيات کی غمگينيوں کاغم نہ کرو‬
‫غم حيات غم يک نفس ہے کچھ بھی نہيں‬
‫ِ‬
‫تم اپنے حسن کی رعنائيوں پہ رحم کرو‬
‫وفا فريب ہے‪ ،‬طول ہوس ہے کچھ بھی نہيں‬
‫مجھے تمہارے تغافل سے کيوں شکايت ہو؟‬
‫مری فنا مرے احساس کا تقاضا ہے‬
‫ميں جانتا ہوں کہ دنيا کا خوف ہے تم کو‬
‫مجھے خبر ہے يہ دنيا عجيب دنيا ہے‬
‫يہاں حيات کے پردے ميں موت پلتی ہے‬
‫روح نغمہ ہے‬
‫شکست ساز کی آواز‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫مجھے تمہاری جدائی کا کوئی رنج نہيں‬
‫مرے خيال کی دنيا ميںميرے پاس ہو تم‬
‫يہ تم نے ٹھيک کہا ہے تمہيں مال نہ کروں‬
‫مگر مجھے يہ بتا دو کہ کيوں اداس ہو تم‬
‫خفا نہ ہونا مری جر أ ت تخاطب پر؟‬
‫تمہيںخبر ہے مری زندگی کی آس ہو تم‬
‫مرا تو کچھ بھی نہيں ہے ميں رو کے جی لوں گا‬
‫اسيرغم نہ رہو‬
‫مگر خدا کے ليے تم‬
‫ِ‬
‫ہوا ہی کيا جو زمانے نے تم کو چھين ليا‬
‫يہاں پہ کون ہوا ہے کسی کا‪ ،‬سوچو تو‬
‫مجھے قسم ہے مری دکھ بھری جوانی کی‬
‫ميں خوش ہوں ميری محبت کے پھول ٹھکرا دو‬
‫ميں اپنی روح کی ہر اک خوشی مٹا لوں گا‬
‫مگر تمہاری مسرت مٹا نہيں سکتا‬
‫ميں خود کو موت کے ہاتھوں ميںسونپ سکتاہوں‬
‫بار مصائب اٹھا نہيں سکتا‬
‫مگر يہ ِ‬
‫تمہارے غم کے سوا اور بھی تو غم ہيں مجھے‬
‫نجات جن سے ميں اک لحظہ پا نہيں سکتا‬

‫يہ اونچے اونچے مکانوں کی ڈيوڑھيوں کے تلے‬
‫ہر ايک گام پہ بھوکے بھکاريوں کی صدا‬
‫ہر ايک گھر ميں ہے افالس اور بھوک کا شور‬
‫ہر ايک سمت يہ انسانيت کی آه و بکا‬
‫يہ کارخانوں ميں لوہے کا شوروغل جس ميں‬
‫ہےدفن الکھوں غريبوں کی روح کا نغمہ‬
‫يہ شاہراہوں پہ رنگين ساڑھيوں کی جھلک‬
‫يہ جھونپﮍوں ميںغريبوں کے بے کفن الشے‬
‫يہ مال روڈ پہ کاروں کی ريل پيل کا شور‬
‫يہ پٹ ڑ يوں پہ غريبوں کے زرد رو بچے‬
‫گلی گلی ميں يہ بکتے ہوئے جواں چہرے‬
‫حسين آنکھوں ميں افسردگی سی چھائی ہوئی‬
‫يہ جنگ اور يہ ميرے وطن کے شوخ جواں‬
‫خريدی جاتی ہے اٹھتی جوانياں جن کی‬
‫يہ بات بات پہ قانو ن و ضابطے کی گرفت‬
‫دور مجبوری‬
‫يہ ذل ّ◌ تيں‪ ،‬يہ غالمی يہ ِ‬
‫يہ غم بہت ہيں مری زندگی مٹانے کو‬
‫اداس ره کے مرے دل کو اور رنج نہ دو‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫ہوس نصيب نظر کو کہيں قرار نہيں‬
‫ميں منتظر ہوں مگر تيرا انتظار نہيں‬
‫ہميں سے رنگِ گلستاں ہميں سے رنگِ بہار‬
‫نظم گلستاں پہ اختيار نہيں‬
‫ہميں کو ِ‬
‫ابھی نہ چھيﮍ محبت کے گيت اے مطرب‬
‫ابھی حيات کا ماحول خوشگوار نہيں‬

‫عہد وفا کو ميں عہد کيا سمجھوں‬
‫تمہارے ِ‬
‫مجھے خود اپنی محبت پہ اعتبار نہيں‬
‫نہ جانے کتنے گلے اس ميں مضطرب ہيں نديم‬
‫وه ايک دل جو کسی کا گلہ گزار نہيں‬
‫گريز کا نہيں قائل حيات سے ليکن‬
‫جو سچ کہوںکہ مجھے موت ناگوار نہيں‬
‫يہ کس مقام پہ پہنچا ديا زمانے نے‬
‫کہ اب حيات پہ ترا بھی اختيار نہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫مرے گيت‬
‫مرے سرکش ترانے سن کے دنيا يہ سمجھتی ہے‬
‫کہ شايد ميرے دل کو عشق کے نغموں سے نفرت ہے‬
‫مجھے ہنگامۂ جنگ و جدل ميں کيف ملتا ہے‬
‫مری فطرت کو خوں ريزی کے افسانے سے رغبت ہے‬
‫مری دنيا ميں کچھ وقعت نہيں ہے رقص و نغمہ کی‬
‫شور آہنگِ بغاوت ہے‬
‫مرا محبوب نغمہ‬
‫ِ‬
‫مگر اے کاش ديکھيں وه مری پرسوز راتوں کو‬
‫ميں جب تاروں پہ نظريں گاڑ کر آنسو بہاتا ہوں‬
‫تصور بن کے بھولی وارداتيں ياد آتی ہيں‬
‫تو سوز و درد کی شدت سے پہروں تلمالتا ہوں‬
‫کوئی خوابوں ميں خوابيده امنگوں کو جگاتی ہے‬
‫تو اپنی زندگی کو موت کے پہلو ميں پاتا ہوں‬
‫ميں شاعر ہوں مجھے فطرت کے نظاروں سے الفت ہے‬
‫دشمن نغمہ سرائی ہو نہيں سکتا‬
‫مرا دل‬
‫ِ‬
‫مجھے انسانيت کا درد بھی بخشا ہے قدرت نے‬
‫مرا مقصد فقط شعلہ نوائی ہو نہيںسکتا‬
‫جواں ہوں ميں جوانی لغزشوں کا ايک طوفاں ہے‬

‫مری باتوں ميں رنگِ پارسائی ہو نہيں سکت ا‬
‫مرے سرکش ترانوں کی حقيقت ہے تو اتنی ہے‬
‫کہ جب بھی ديکھتا ہوں بھوک کے مارے کسانوں کو‬
‫غريبوں مفلسوں کو بے کسوں بے سہاروں کو‬
‫سسکتی نازنيينوں کو‪ ،‬تﮍپتے نوجوانوں کو‬
‫حکومت کے تشدد کو امارت کے تکبر کو‬
‫کسی کے چيتھﮍوں کو اور شہنشاہی خزانوں کو‬
‫بزم عشرت ال نہيںسکتا‬
‫تاب‬
‫ِ‬
‫تو دل ِ‬
‫نشاط ِ‬
‫ميںچاہوں بھی خواب آور ترانے گا نہيں سکتا‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫اشعار‬
‫قوت گفتار ہے محبوس‬
‫ہر چند مری‬
‫ِ‬
‫خاموش مگر طبع خود آرا نہيں ہوتی‬
‫معمورۀ احساس ميں ہے حشر سا برپا‬
‫انسان کی تذليل گوارا نہيں ہوتی‬
‫ناالں ہوں ميں بيدارئ احساس کے ہاتھوں‬
‫دنيا مرے افکار کی دنيا نہيں ہوتی‬
‫بيگانہ صفت جادۀ منزل سے گزرجا‬
‫سزاوار نظاره نہيں ہوتی‬
‫ہر چيز‬
‫ِ‬
‫فطرت کی مشيت بھی بﮍی چيز ہے ليکن‬
‫فطرت کبھی بے بس کا سہارا نہيں ہوتی‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫سوچتا ہوں‬

‫سوچتا ہوںکہ محبت سے کنارا کرلوں‬
‫دل کو بيگانۂ ترغيب و تمنا کرلوں‬
‫جنون رسوا‬
‫سوچتا ہوںکہ محبت ہے‬
‫ِ‬
‫چند بے کار سے بے ہوده خيالوں کا ہجوم‬
‫ايک آزاد کو پابند بنانے کی ہوس‬
‫ايک بيگانے کو اپنانے کی سعئ موہوم‬
‫سوچتا ہوں کہ محبت سے سرور و مستی‬
‫اس کی تنوير سے روشن ہے فضائے ہستی‬
‫سوچتا ہوں کہ محبت ہے بشر کی فطرت‬
‫اس کا مٹ جانا مٹا دينا بہت مشکل ہے‬
‫سوچتا ہوں کہ محبت سے ہے تابنده حيات‬
‫اور يہ شمع بجھا دينا بہت مشکل ہے‬
‫سوچتا ہوں کہ محبت پہ کﮍی شرطيں ہيں‬
‫اس تمدن ميں مسرت پہ بﮍی شرطيں ہيں‬
‫سوچتا ہوں کہ محبت ہے اک افسرده سی الش‬
‫چادر عزت و ناموس ميں کفنائی ہوئی‬
‫ِ‬
‫دور سرمايہ کی روندی ہوئی رسوا ہستی‬
‫ِ‬
‫درگہ مذہب و اخالق سے ٹھکرائی ہوئی‬
‫ِ‬
‫سوچتا ہوں کہ بشر اور محبت کا جنوں‬
‫ايسے بوسيده تمدن ميں ہے اک کار زبوں‬
‫سوچتا ہوں کہ محبت نہ بچے گی زنده‬
‫پيش ازاں وقت کہ سﮍ جائے يہ گلتی ہوئی الش‬
‫يہی بہتر ہے کہ بيگانۂ الفت ہو کر‬
‫اپنے سينے ميںکروں جذبۂ نفرت کی تالش‬

‫سوچتا ہوں کہ محبت سے کنارا کر لوں‬
‫دل کو بيگانۂ ترغيب و تمنا کر لوں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ناکامی‬
‫غم عشق کو کھونا چاہا‬
‫ميں نے ہر چند ِ‬
‫غم دنيا ميں سمونا چاہا‬
‫غم الفت ِ‬
‫ِ‬
‫وہی افسانے مری سمت رواں ہيں اب تک‬
‫وہی شعلے مرے سينے ميں نہاں ہيں اب تک‬
‫وہی بے سود خلش ہے مرے سينے ميں ہنوز‬
‫وہی بيکار تمنائيں جواں ہيںاب تک‬
‫وہی گيسو مری راتوں پہ ہيں بکھرے بکھرے‬
‫وہی آنکھيں مری جانب نگراں ہيں اب تک‬
‫کثرت غم بھی مرے غم کا مداوا نہ ہوئی!‬
‫ِ‬
‫ميرے بے چين خيالوں کو سکون مل نہ سکا‬
‫دل نے دنيا کے ہر اک درد کو اپنا تو ليا‬
‫انداز جنوں مل نہ سکا‬
‫مضمحل روح کو‬
‫ِ‬
‫ميری تخ ئ يل کا شيرازۀ برہم ہے وہی‬
‫ميرے بجھتے ہوئے احساس کا عالم ہے وہی‬
‫وہی بے جان ارادے وہی بے رنگ سوال‬
‫وہی بے روح کشاکش وہی بے چين خيال‬
‫کشمکش صبح و مسا کا انجام‬
‫آه اس‬
‫ِ‬
‫ميں بھی ناکام مری سعی عمل بھی ناکام‬

‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔]‬

‫مجھے سوچنے دے‬
‫ميری ناکام محبت کی کہانی مت چھيﮍ‬
‫اپنی مايوس امنگوں کا فسانہ نہ سنا‬
‫زندگی تلخ سہی ‪ ،‬زہر سہی‪ ،‬سم ہی سہی‬
‫دردو آزار سہی‪ ،‬جبر سہی‪ ،‬غم ہی سہی‬
‫ليکن اس درد و غم و جبر کی وسعت کو تو ديکھ‬
‫ظلم کی چھا ؤ ں ميں دم توڑتی خلقت کو تو ديکھ‬
‫اپنی مايوس امنگوں کا فسانہ نہ سنا‬
‫ميری ناکام محبت کی کہانی مت چھيﮍ‬
‫جلسہ گاہوں ميں يہ دہشت زده سہمے انبوه‬
‫ره گزاروں پہ فالکت زده لوگوں کا گروه‬
‫بھوک اور پياس سے پژمرده سيہ فام زميں‬
‫تيره و تار مکاں‪ ،‬مفلس و بيمار مکيں‬
‫نوع انساں ميں يہ سرمايہ و محنت کا تضاد‬
‫ِ‬
‫امن و تہذيب کے پرچم تلے قوموں کا فساد‬
‫سيالب عظيم‬
‫ہر طرف آتش و آہن کا يہ‬
‫ِ‬
‫نت نئے طرز پہ ہوتی ہوئی دنيا تقسيم‬
‫لہلہاتے ہوئے کھيتوں پہ جوانی کا سماں‬
‫اور دہقان کے چھپر ميں نہ بتی نہ دھواں‬
‫يہ فلک بوس مليں دلکش و سميں بازار‬
‫يہ غالظت پہ چھپٹتے ہوئے بھوکے نادار‬

‫دور ساحل پہ وه شفاف مکانوں کی قطار‬
‫سرسراتے ہوئے پردوں ميں سمٹتے گلزار‬
‫سيالب رواں‬
‫درو ديوار پہ انوار کا‬
‫ِ‬
‫شاعر مدہوش کے خوابوں کا جہاں‬
‫جيسے اک‬
‫ِ‬
‫يہ سبھی کيوں ہے يہ کيا ہے مجھے کچھ سوچنے دے‬
‫کون انساں کا خدا ہے مجھے کچھ سوچنے دے‬
‫اپنی مايوس امنگوں کا فسانہ نہ سنا‬
‫ميری ناکام محبت کی کہانی مت چھيﮍ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫اشعار‬
‫عقائد وہم ہيں‪ ،‬مذہب خيال خام ہے ساقی‬
‫ذہن انساں بستۂ اوہام ہے ساقی‬
‫ازل سے ِ‬
‫حقيقت آشنائی اصل ميں گم کرده راہی ہے‬
‫عروس آگہی پروردۀ ابہام ہے ساقی‬
‫ِ‬
‫مبارک ہو ضعيفی کو خرد کا فلسفہ رانی؟‬
‫برت انجام ہے ساقی‬
‫جوانی بے نياز ع ِ‬
‫اسير حلقۂ نيک و بد عالم‬
‫ہوس ہوگی‬
‫ِ‬
‫فکر ننگ و نام ہے ساقی‬
‫محبت ماورائے ِ‬
‫ابھی تک راستے کے پيچ و خم سے دل دھﮍکتا ہے‬
‫مرا ذوق طلب شايد ابھی تک خام ہے ساقی‬
‫وہاں بھيجا گيا ہوں چاک کرنے پردۀ شب کو‬
‫جہاں ہر صبح کے دامن پہ عکس شام ہے ساقی‬

‫مرے ساغر ميں مے ہے اور ترے ہاتھوں ميں بربط ہے‬
‫وطن کی سرزميں ميں بھوک سے کہرام ہے ساقی‬
‫برسر پيکار ہے پر ہول شعلوں سے‬
‫زمانہ‬
‫ِ‬
‫ترے لب پر ابھی تک نغمۂ خيام ہے ساقی‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫صبح نوروز‬
‫ِ‬
‫پھوٹ پﮍيں مشرق سے کرنيں‬
‫حال بنا ماضی کا فسانہ‬
‫گونجا مستقبل کا ترانہ‬
‫بھيجے ہيں احباب نے تحفے‬
‫اٹے پﮍے ہيں ميز کے کونے‬
‫دلہن بنی ہوئی ہيں راہيں‬
‫سال نو کے‬
‫جشن منا ؤ ِ‬
‫نکلی ہے بنگ ل ے کے در سے‬
‫اک مفلس دہقان کی بيٹی‬
‫افسرده مرجھائی ہوئی سی‬
‫جسم کے دکھتے جوڑ دباتی‬
‫آ نچل سے سينے کوچھپاتی‬
‫مٹھی ميں اک نوٹ دبائے‬
‫سال نو کے‬
‫جشن منا ؤ ِ‬
‫بھوکے‪ ،‬زرد گداگر بچے‬
‫کار کے پيچھے بھاگ رہے ہيں‬
‫وقت سے پہلے جاگ ُاٹھے ہيں‬
‫پيپ بھری آنکھيں سہالتے‬
‫سر کے پھوڑوں کو کجھالتے‬
‫وه ديکھو کچھ اور بھی نکلے‬
‫سال نو کے‬
‫جشن منا ؤ ِ‬
‫‪………………….‬‬

‫گريز‬
‫جنون وفا ہے زوال آماده‬
‫مرا‬
‫ِ‬
‫فسوان زيبائی‬
‫شکست ہوگيا تيرا‬
‫ِ‬
‫گرد مايوسی‬
‫ان آرزوں پہ چھائی ہے ِ‬
‫جنہوں نے تيرے تبسم ميں پرورش پائی‬
‫فريب شوق کے رنگيں طلسم ٹوٹ گئے‬
‫ِ‬
‫حقيقتوں نے حوادث سے پھر جالپائی‬
‫سکون و خواب کے پردے سرکتے جاتے ہيں‬
‫دل و دماغ ميں وحشت کی کارفرمائی‬
‫نور تاباں تھا‬
‫وه تارے جن ميں محبت کا ِ‬
‫وه تارے ڈوب گئے لے کے رنگ و رعنائی‬
‫سالگئی تھيں جنھيں تير ملتفت نظريں‬
‫وه درد جا گ ُاٹھے پھر سے لے کے انگﮍائی‬
‫عالم افسردگی ہے رو بہ فروغ‬
‫عجيب ِ‬
‫نہ اب نظر کو تقاضا نہ دل تمنائی‬
‫تری نظر‪ ،‬ترے گيسو‪ ،‬تری جبيں ‪ ،‬ترے لب‬
‫مری اداس طبعيت ہے سب سے اکتائی‬
‫ميں زندگی کے حقائق سے بھاگ آيا تھا‬
‫کہ مجھ کو خود ميں چھپا لے تری فسوں زائی‬
‫مگر يہاں بھی تعاقب کيا حقائق نے‬
‫جنت شکيبائی‬
‫يہاں بھی مل نہ سکی‬
‫ِ‬
‫ہر ايک ہاتھ ميں لے کر ہزار آئينے‬
‫حيات بند دريچوں سے بھی گزر آئی‬

‫مرے ہر ايک طرف ايک شور گونج اٹھا‬
‫اور اس ميں ڈوب گئی عشرتوں کی شہنائی‬
‫کہاں تلک کوئی زنده حقيقتوں سے بچے‬
‫کہاں تلک کرے چھپ چھپ کے نغمہ پيرائی‬
‫وه ديکھ سامنے کے پر شکوه ايواں سے‬
‫کسی کرائے کی لﮍکی کی چيخ ٹکرائی‬
‫وه پھر سماج نے دو پيار کرنے والوں کو‬
‫سزا کے طور پر بخشی طويل تنہائی‬
‫پھر ايک تيره و تاريک چھونپﮍی کے تلے‬
‫سسکتے بچے پہ بيوه کی آنکھ بھر آئی‬
‫وه پھر بکی کسی مجبور کی جواں بيٹی!‬
‫غرور برنائی‬
‫وه پھر جھکا کسی در پر‬
‫ِ‬
‫وه پھر کسانوں کے مجمع پہ گن مشينوں سے‬
‫حقوق يافتہ طبقے نے آگ برسائی‬
‫سکوت حلقۂ زنداں سے ايک گونج ُاٹھی‬
‫ِ‬
‫اور اس کے ساتھ مرے ساتھيوں کی ياد آئی‬
‫نہيں نہيں مجھے يوں ملتفت نظر سے نہ ديکھ‬
‫تاب نغمہ پيرائی‬
‫نہيں نہيں مجھے اب ِ‬
‫جنون وفاہے زوال آماده‬
‫مرا‬
‫ِ‬
‫فسون زيبائی‬
‫شکست ہوگيا تيرا‬
‫ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫کچھ باتيں‬

‫ديس کے ادبار کی باتيں کريں‬
‫اجنبی سرکار کی باتيں کريں‬
‫اگلی دنيا کے فسانے چھوڑ کر‬
‫اس جہنم زار کی باتيں کريں‬
‫ہو چکے اوصاف پردے کے بياں‬
‫شاہد بازار کی باتيں کريں‬
‫ِ‬
‫دہر کے حاالت کی باتيں کريں‬
‫اس مسلسل رات کی باتيں کريں‬
‫ٰ‬
‫سلوی کا زمانہ جا چکا‬
‫من و‬
‫بھوک اور آفات کی باتيں کريں‬
‫آو پرکھيں دين کے اوہام کو‬
‫علم موجودات کی باتيں کريں‬
‫ِ‬
‫جابرو مجبور کی باتيں کريں‬
‫اس کہن دستور کی باتيں کريں‬
‫تاج شاہی کے قصيدے ہو چکے‬
‫ِ‬
‫فاقہ کش جمہور کی باتيں کريں‬
‫گرنے والے قصر کی توصيف کيا‬
‫تيشۂ مزدور کی باتيں کريں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫چکلے‬
‫يہ کوچے يہ نيالم گھر دلکشی کے‬
‫يہ لٹتے ہوئے کارواں زندگی کے‬
‫کہاں ہيں کہاں ہيں محافظ خودی کے‬

‫تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫خوان‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫يہ پر پيج گلياں يہ بے خواب بازار‬
‫يہ گمنام راہی يہ س ِ◌ ک ّ◌ وں کی جھنکار‬
‫يہ عصمت کے سودے يہ سودوں پہ تکرار‬
‫خوان تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫تعف ّ◌ ن سے پر نيم روشن يہ گلياں‬
‫يہ مسلی ہوئی ادھ کھلی زرد کلياں‬
‫يہ بکتی ہوئی کھوکلی رنگ رلياں‬
‫تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫خوان‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫وه اجلے دريچوں ميں پائل کی چھن چھن‬
‫تنفس کی الجھن پہ طبلے کی دھن دھن‬
‫يہ بے روح کمروں ميں کھانسی کی ٹھن ٹھن‬
‫تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫ثنا خوان‬
‫ِ‬
‫يہ گونچے ہوئے قہقہے راستوں پر‬
‫يہ چاروں طرف بھيﮍ سی کھﮍکيوں پر‬
‫يہ آواز کھنچتے ہوئے آنچلوں پر‬
‫خوان تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫يہ پھولوں کے گجرے يہ پيکوں کے چھينٹے‬
‫يہ بے باک نظريں يہ گستاخ فقرے‬
‫يہ ڈھلکے بدن اور يہ مدقوق چہرے‬
‫خوان تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫يہ بھوکی نگاہيں حسينوں کی جانب‬
‫يہ بﮍھتے ہوئے ہاتھ سينوں کی جانب‬
‫لپک ت ے ہوئے پا ؤ ں زينوں کی جانب‬
‫ثنا خوان تقديس مشرق کہاں ہيں‬
‫يہاں پير بھی آچکے ہيں جواں بھی‬
‫تنو مند بيٹے بھی‪ ،‬ابا مياں بھی‬
‫يہ بيوی بھی ہے اور بہن بھی ہے ماں بھی‬

‫تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫ثنا خوان‬
‫ِ‬
‫مدد چاہتی ہے يہ حو ّ◌ ا کی بيٹی‬
‫يشودھا کی ہم جنس رادھا کی بيٹی‬
‫پيمبر کی امت‪ ،‬زليخا کی بيٹی‬
‫خوان تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫خدايان دين کو بال ؤ‬
‫بال ؤ‬
‫ِ‬
‫يہ کوچے‪ ،‬يہ گلياں‪ ،‬يہ منظر دکھا ؤ‬
‫خوان تقديس مشرق کو ال ؤ‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫خوان تقديس مشرق کہاں ہيں؟‬
‫ثنا‬
‫ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫طرح نو‬
‫ِ‬
‫شوکت اسکندری کی خير‬
‫سعئی بقائے‬
‫ِ‬
‫ماحول خشت بار ميں شيشہ گری کی خير‬
‫ِ‬
‫بيزار ہے کنشت و کليسا سے اک جہاں‬
‫سوداگران دين کی سوداگری کی خير‬
‫ِ‬
‫جوش انتقام‬
‫فاقہ کشوں کے خون ميں ہے‬
‫ِ‬
‫سرمايہ کے فريب جہاں پروری کی خير‬
‫طبقات متبذل ميں ہے تنظيم کی نمود‬
‫ِ‬
‫شاہنشہوں کے ضابطۂ خود سری کی خير‬
‫حقوق حيات کا‬
‫احساس بﮍھ رہا ہے‬
‫ِ‬
‫حقوق ستم پروری کی خير‬
‫پيدائشی‬
‫ِ‬
‫ابليس خنده زن ہے مذاہب کی الش پر‬
‫پيغمبران دہر کی پيغمبری کی خير‬
‫ِ‬
‫صحن جہاں ميں رقص کناں ہيں تباہياں‬
‫ِ‬

‫آقائے ہست و بود کی صنعت گری کی خير‬
‫شعلے لپک رہے ہيں جہنم کی گود سے‬
‫باغ جناں ميں جلوۀ حورو پری کی خير‬
‫ِ‬
‫رخ زيست کا نقاب‬
‫انساں ُالٹ رہا ہے ِ‬
‫مذہب کے اہتمام فسوں پروری کی خير‬
‫جہان نو‬
‫الحاد کر رہا ہے مرتب‬
‫ِ‬
‫ديرو حرم کے حيلۂ غارت گری کی خير‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫تاج محل‬
‫مظہر الفت ہی سہی‬
‫تاج تيرے ليے اک‬
‫ِ‬
‫تجھ کو اس وادئ رنگيں سے عقيدت ہی سہی‬
‫ميری محبوب کہيں اور مال کر مجھ سے‬
‫بزم شاہی ميں غريبوں کا گزر کيا معنی؟‬
‫سطوت شاہی کے نشاں‬
‫ثبت جس راه ميں ہوں‬
‫ِ‬
‫اس پہ الفت بھری روحوں کا سفر کيا معنی؟‬
‫تشہير وفا‬
‫ميری محبوب پس پرد ۀ‬
‫ِ‬
‫تو نے سطوت کے نشانوں کو تو ديکھا ہوتا‬
‫مرده شاہوں کے مقابر سے بہلنے والی‬
‫اپنے تاريک مکانوں کو تو ديکھا ہوتا‬
‫ان گنت لوگوں نے دنيا ميں محبت کی ہے‬
‫کون کہتا ہے کہ صادق نہ تھے جذبے ان کے‬
‫ليکن ان کے ليے تشہير کا سامان نہيں‬
‫کيونکہ وه لوگ بھی اپنی ہی طرح مفلس تھے‬
‫يہ عمارات و مقابر يہ فصيليں يہ حصار‬
‫مطلق الحکم شہنشاہوں کی عظمت کے ستوں‬

‫سينۂ دہر کے ناسور ميں کہنہ ناسور‬
‫جذب ہے ان ميں ترے اور مرے اجداد کا خوں‬
‫ميری محبوب! انہيں بھی تو محبت ہوگی!‬
‫شکل جميل‬
‫جن کی صناعی نے بخشی ہے اسے‬
‫ِ‬
‫ان کے پياروں کے مقابر رہے بے نام و نمود‬
‫آج تک ان پہ جالئی نہ کسی نے قنديل‬
‫يہ چمن زار يہ جمنا کا کناره‪ ،‬يہ محل‬
‫يہ منقش درو ديوار يہ محراب يہ طاق‬
‫اک شہنشاه نے دولت کا سہارا لے کر‬
‫ہم غريبوں کی محبت کا اڑايا ہے مذاق‬
‫ميری محبوب! کہيں اور مال کر مجھ سے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫طلوع اشتراکيت‬
‫ِ‬
‫چشن بپا ہے کٹيا ؤ ں ميں‪ ،‬اونچے ايواں کانپ رہے ہيں‬
‫مزدروں کے بگﮍے تيور ديکھ کے سلطاں کانپ رہے ہيں‬
‫جاگے ہيں افالس کے مارے‪ُ ،‬اٹھے ہيں بے بس دکھيارے‬
‫سينوں ميں طوفاں کا تالطم ‪ ،‬آنکھوں ميں بجلی کے شرارے‬
‫چوک چوک پر گلی گلی ميں سرخ پھريرے لہراتے ہيں‬
‫مظلوموں کے باغی لشکر سيل صفت ُامڈے آتے ہيں‬
‫شاہی درباروں کے در سے فوجی پہرے ختم ہوئے ہيں‬
‫ذاتی جاگيروں کے حق اور مہمل دعوے ختم ہوئے ہيں‬
‫شور مچا ہے بازاروں ميں‪ ،‬ٹوٹ گئے در زندانوں کے‬
‫واپس مانگ رہی ہے دنيا غصب شده حق انسانوں کے‬

‫حق نسائی مانگ رہی ہيں‬
‫رسوا بازاری خاتونيں ِ‬
‫صديوں کی خاموش زبانيں سحر نوائی مانگ رہی ہيں‬
‫روندی کچلی آوازوں کے شور سے دھرتی گونج اٹھی ہے‬
‫دنيا کے انيائے نگر ميں حق کی پہلی گونج ُاٹھی ہے‬
‫جمع ہوئے ہيں چوراہوں پر آکے بھوک ے اور گداگر‬
‫ايک لپکتی آندھی بن کر ايک بھبکتا شعلہ ہو کر‬
‫کاندھوں پر سنگين کداليں ہونٹوں پر بے باک ترانے‬
‫دہقانوں کے دل نکلے ہيں اپنی بگﮍی آپ بنانے‬
‫آج پرانی تدبيروں سے آگ کے شعلے تھم نہ سکيں گے‬
‫ُابھرے جذبے دب نہ سکيں گے اکھﮍے پرچم جم نہ سکيں گے‬
‫راج محل کے دربانوں سے يہ سرکش طوفاں نہ رکے گا‬
‫سيل بے پاياں نہ رکے گا‬
‫چند کرائے کے تنکوں سے ِ‬
‫کانپ رہے ہيں ظالم سلطاں ٹوٹ گئے دل جب ّ◌ اروں کے‬
‫الہی منہ اترے ہيں غد ّ◌ اروں کے‬
‫ظل ٰ‬
‫بھاگ رہے ہيں ِ‬
‫ايک نيا سورج چمکا ہے‪ ،‬ايک انوکھی ضوباری ہے‬
‫ختم ہوئی افرادکی شاہی‪ ،‬اب جمہور کی ساالری ہے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫اجنبی محافظ‬
‫اجنبی ديس کے مضبوط گرانڈيل جواں‬
‫در خاص پہ استاده ہيں‬
‫اونچے ہوٹل کے ِ‬
‫اور نيچے مرے م ج بور وطن کی گلياں‬
‫جن ميں آواره پھرا کرتے ہيں بھوکوں کے ہجوم‬
‫زرد چہروں پہ نقاہت کی نمود‬
‫خون ميں سينکﮍوں سالوں کی غالمی کا جمود‬

‫علم کے نور سے عاری۔۔۔۔۔محروم‬
‫فلک ہند کے افسرده ۔۔۔۔نجوم‬
‫ِ‬
‫جن کی تخ ئ يل کے پر‬
‫چھو نہيں سکتے ہيں اس اونچی پہاڑی کا سرا‬
‫جس پہ ہوٹل کے دريچوں ميں کھﮍے ہيں تن کر‬
‫اجنبی ديس کے مضبوط گرانڈيل جواں‬
‫منہ ميں سگريٹ ليے ہاتھوں ميں برانڈی کا گالس‬
‫جيب ميں نقرئی سکوں کی کھنک‬
‫بھوکے دہقانوں کے ماتھے کا عرق‬
‫رات کو جس کے عو ض بکتا ہے‬
‫کسی افالس کی ماری کا تقدس ۔۔۔۔يعنی‬
‫کسی دوشيز ۀ مجبور کی عصمت کا غرور‬
‫محفل عيش کے گونجے ہوئے ايوانوں ميں‬
‫ِ‬
‫اونچے ہوٹل کے شبستانوں ميں‬
‫قہقہے مارتے ہنستے ہوئے استاده ہيں‬
‫اجنبی ديس کے مضبوط گرانڈيل جواں‬
‫اسی ہوٹل کے قريب‬
‫بھوکے مجبور غالموں کے گروه‬
‫ٹکٹکی باندھ کے تکتے ہوئے اوپر کی طرف‬
‫ساعت ناياب کے جب‬
‫منتظر بيٹھے ہيں اس‬
‫ِ‬
‫بوٹ کی نوک سے نيچے پھينکے‬
‫اجنبی ديس کے بے فکر جوانوں کا گروه‬
‫کوئی س ِ◌ ک ّ◌ ه‪ ،‬کوئی سگريٹ‪ ،‬کوئی کيک‬
‫يا ڈبل روٹی کے جھوٹے ٹکﮍے‬
‫چھينا جھپٹی کے مناظر کا مزه لينے کو‬
‫پالتو کتوں کے احساس پہ ہنس دينے کو‬
‫بھوکے مجبور غالموں کا گروه‬
‫ٹکٹکی باندھ کے تکتا ہوا استاده ہے‬
‫کاش يہ بے حس و بے وقعت و بيدل انساں‬
‫روم کے ظلم کی زنده تصوير‬
‫اپنا ماحول بدل دينے کے قابل ہوتے‬
‫ڈيﮍھ سو سال کے پابند سالسل کتے‬
‫خراج قوت‬
‫اپنے آقا ؤ ں سے لے سکتے‬
‫ِ‬
‫کاش يہ اپنے ليے آپ صف آراء ہوتے‬
‫اپنی تکليف کا خود آپ مداوا ہوتے‬

‫ان کی دل ميں ابھی باقی رہتا‬
‫قومی غيرت کا وجود‬
‫ان کی سنگين و سيہ سينوں ميں‬
‫گل نہ ہوتی ابھی احساس کی شمع‬
‫اور پورب سے ُامڈتے ہوئے خطرے کے ليے‬
‫يہ کرائے کے محافظ نہ منگانے پﮍتے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫بالوا‬
‫ديکھو دور افق ک ی ضوسے جھانک رہا ہے سرخ سويرا‬
‫جاگو اے مزدور کسانو!‬
‫ُاٹھو اے مظلوم انسانو!‬
‫دھرتی کے ان داتا تم ہو‬
‫جگ کے پران ودھاتا تم ہو‬
‫دھنيوں کی خوشحالی تم ہو‬
‫کھيتوں کی ہريالی تم ہو‬
‫اونچے محل بنائے تم نے‬
‫شاہی تخت سجائے تم نے‬
‫ہيرے لعل نکالے تم نے‬
‫نيزے بھالے ڈھالے تم نے‬
‫ہر بگيا کے مالی تم ہو‬
‫اس سنسار کے والی تم ہو‬
‫وقت ہے دھرتی کو اپنا لو‬
‫آگے بﮍھو ہتھيار سنبھالو‬
‫اٹھو اے مظلوم انسانو‬
‫جاگو اے مزدور کسانو‬
‫ديکھو دھرتی کانپ رہی ہے‬
‫گرد پھرير ا ڈھانپ رہی ہے‬
‫کشٹ کی جو ا ال پھوٹ پﮍی ہے‬
‫وقت ہے تھوڑا جنگ کﮍی ہے‬
‫پھيل رہے ہيں کال کے گھيرے‬
‫تھامو اپنے سرخ پھريرے‬
‫تم ہو جگ جنتا کے سينک‬

‫پاپ کے ناشک ستيہ کے رکھشک‬
‫بھوک کے عادی ظلم کے پالے‬
‫کالی کٹيا ؤ ں کے اجالے‬
‫کيا روکے گی تم کو شاہی‬
‫تم ہو بہادر سرخ سپاہی‬
‫جاگو اے مزدور کسانو‬
‫اٹھو اے مظلوم انسانو‬
‫ديکھو دور افق کی ضو سے جھانک رہا ہے سرخ سويرا‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫شہزادے‬
‫عظمت اجداد کے قصے لے کر‬
‫ذہن ميں‬
‫ِ‬
‫اپنے تاريک گھروندوں کے خال ميں کھو جا ؤ‬
‫مرمريں خوابوں کی پريوں سے لپٹ کر سو جا ؤ‬
‫ابر پاروں پہ چلو‪ ،‬چاند ستاروں ميں اڑو‬
‫يہی اجداد سے ورثہ ميں مال ہے تم کو‬
‫دور مغرب کی فضا ؤ ں ميں دہکتی ہوئی آگ‬
‫اہل سرمايہ کی آويزش باہم نہ سہی‬
‫ِ‬
‫جنگِ سرمايہ ومحنت ہی سہی‬
‫دور مغرب ميں ہے۔۔۔مشرق کی فضا ميں تو نہيں‬
‫تم کو مغرب کے بکھيﮍوں سے بھال کيا لينا؟‬
‫تيرگی ختم ہوئی سرخ شعائيں پھيليں‬
‫دور مغرب کی فضاوں ميں ترانے گونجے‬
‫ِ‬
‫فتح جمہور کے ‪ ،‬انصاف کے‪ ،‬آزادی کے‬
‫ساحل شرق پہ گيسوں کا دھواں چھانے لگا‬
‫آگ برسانے لگے اجنبی توپوں کے دہن‬
‫خواب گاہوں کی چھتيں گرنے لگيں‬
‫اپنے بستر سے ُاٹھو‬
‫نئے آقا ؤ ں کی تعظيم کرو‬
‫اور ۔۔۔۔پھر اپنے گھرندوں کے خال ميں کھو جا ؤ‬
‫تم بہت دير۔۔۔۔۔بہت دير تلک سوئے رہے‬

‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫شعاع فردا‬
‫ِ‬
‫تيره و تار فضاؤں ميں ستم خورده بشر‬
‫اور کچھ دير اجالے کے ليے ترسے گا‬
‫اور کچھ دير اٹھے گا دل گيتی سے دھواں‬
‫اور کچھ دير فضا ؤ ں سے لہو برسے گا‬
‫اور پھر احمريں ہونٹوں کے تبسم کی طرح‬
‫رات کے چاک سے پھوٹے گی شعاعوں کی لکير‬
‫اور جمہور کے بيدار تعاون کے طفيل‬
‫ختم ہو جائے گی انساں کے لہو کی تقطير‬
‫اور کچھ دير بھٹک لے مرے درمانده نديم‬
‫اور کچھ دن ابھی زہراب کے ساغر پی لے‬
‫عروس فردا‬
‫نور افساں چلی آتی ہے‬
‫ِ‬
‫حال تاريک و سم افشاں سہی ليکن جی لے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫بنگال‬
‫جہان کہنہ کے مفلوج فلسفہ دانو!‬
‫ِ‬
‫نظام نو کے تقاضے سوال کرتے ہيں‬
‫ِ‬
‫يہ شاہراہيں اسی واسطے بنی تھيں کيا؟‬
‫کہ ان پہ ديس کی جنتا سسک سسک کے مرے‬
‫زميں نے کيا اسی کارن اناج اگال تھا‬
‫کہ نسل آدم و حوا بلک بلک کے مرے‬
‫ِمليں اسی ليے ريشم کے ڈھير بنتی ہيں‬
‫کہ دختران وطن تار تار کو ترسيں‬
‫چمن کو اس ليے مالی نے خو ن سے سينچا‬

‫کہ اس کی اپنی نگاہيں بہار کو ترسيں‬
‫قوت تخليق کے خداوندو!‬
‫زميں کی‬
‫ِ‬
‫ِملوں کے منتظمو! سلطنت کے فرزندو‬
‫پچاس الکھ فسرده گلے سﮍے ڈھانچے‬
‫نظام زر کے خالف احتجاج کرتے ہيں‬
‫خموش ہونٹوں سے دم توڑتی نگاہوں سے‬
‫بشر بشر کے خالف احتجاج کرتے ہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫فن کار‬
‫ميں نے جو گيت ترے پيار کی خاطر لکھے‬
‫آج ان گيتوں کو بازار ميں لے آيا ہوں‬
‫آج دک ّ◌ ان پہ نيالم اٹھے گا ُان کا‬
‫تو نے جن گيتوں پہ رکھی تھی محبت کی اساس‬
‫آج چاندی کے ترازو ميں تلے گی ہر چيز‬
‫ميرے افکار‪ ،‬مری شاعری ‪ ،‬ميرا احساس‬
‫جو تری ذات سے منسوب تھے ان گيتوں کو‬
‫مفلسی جنس بنانے پہ اتر آئی ہے‬
‫رخ رنگيں کے فسانوں کے عو ض‬
‫بھوک تيرے ِ‬
‫چند اشيائےضرورت کی تمنائی ہے‬
‫گہہ محنت و سرمايہ ميں‬
‫ديکھ اس عر ص ه ِ‬
‫ميرے نغمے بھی مرے پاس نہيں ره سکتے‬
‫تيرے جلوے کسی زردار کی ميراث سہی‬
‫تيرے خاکے بھی مرے پاس نہيں ره سکتے‬
‫آج ان گيتوں کو بازار ميں لے آيا ہوں‬
‫ميں نے جو گيت ترے پيار کی خاطر لکھے‬

‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫کبھی کبھی‬
‫کبھی کبھی مرے دل ميں خيال آتا ہے‬
‫کہ زندگی تری زلفوں کی نرم چھا ؤ ں ميں‬
‫گزرنے پاتی تو شاداب ہو بھی سکتی تھی‬
‫يہ تيرگی جو مری زيست کا مقدر ہے‬
‫تری نظر کی شعاعوں ميں کھو بھی سکتی تھی‬
‫عجب نہ تھا کہ ميں بے گانۂ الم ہو کر‬
‫ترے جمال کی رعنائيوں ميں کھو رہتا‬
‫ترا گداز بدن‪ ،‬تيری نيم باز آنکھيں‬
‫انہيں حسين فسانوں ميں محو ہو رہتا‬
‫پکارتيں مجھے جب تلخياں زمانے کی‬
‫ترے لبوں سے حالوت کے گھونٹ پی ليتا‬
‫حيات چيختی پھرتی برہنہ سر اور ميں‬
‫گھنيری زلفوں کے سائے ميں چھپ کے جی ليتا‬
‫مگر يہ ہو نہ سکا اور اب يہ عالم ہے‬
‫کہ تو نہيں ترا غم‪ ،‬تری جستجو بھی نہيں‬
‫گزر رہی ہے کچھ اس طرح زندگی جيسے‬
‫اسے کسی کے سہارے کی آرزو بھی نہيں‬
‫زمانے بھر کے دکھوں کو لگا چکا ہوں گلے‬
‫گزر رہا ہوں کچھ انجانی ره گزاروں سے‬

‫مہيب سائے مری سمت بﮍھتے آتے ہيں‬
‫حيات و موت کے پرہول خارزاروں ميں‬
‫نہ کوئی جادۀ منزل نہ روشنی کا سراغ‬
‫بھٹک رہی ہے خال ؤ ں ميں زندگی ميری‬
‫انہی خال ؤ ں ميں ره جاؤں گا کبھی کھو کر‬
‫ميں جانتا ہوں مری ہم نفس مگر يونہی‬
‫کبھی کبھی مرے دل ميں خيال آتا ہے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫فرار‬
‫اپنے ماضی کے تصور سے ہراساں ہوں ميں‬
‫اپنے گزرے ہوئے ايام سے نفرت ہے مجھے‬
‫اپنی بے کار تمنا ؤ ں پہ شرمنده ہوں‬
‫اپنی بے سود اميدوں پہ ندامت ہے مجھے‬
‫ميرے ماضی کو اندھيروں ميں دبا رہنے دو‬
‫مرا ماضی مری ذلت کے سوا کچھ بھی نہيں‬
‫ميری اميدوں کا حاصل مری کاوش کاصلہ‬
‫ايک بے نام اذی ّ◌ ت کے سوا کچھ بھی نہيں‬
‫کتنی بے کار اميدوں کا سہارا لے کر‬
‫ميں نے ايوان سجائے تھے کسی کی خاطر‬
‫کتنی بے ربط تمنا ؤ ں کے مبہم سائے‬
‫اپنے خوابوں ميں بسائے تھے کسی کی خاطر‬
‫مجھ سے اب ميری محبت کے فسانے نہ کہو‬
‫مجھ کو کہنے دو کہ ميں نے انہيں چاہا ہی نہيں‬
‫اور وه مست نگاہيں جو مجھے بھول گئيں‬
‫ميں نے ا ن مست نگاہوں کو سراہا ہی نہيں‬

‫مجھ کو کہنے دو کہ ميں آج بھی جی سکتاہوں‬
‫عشق ناکام سہی‪ ،‬زندگی ناکام نہيں‬
‫ان کو اپنانے کی خواہش انہيں پانے کی طلب‬
‫شوق بے کار سہی‪ ،‬سعئ غم انجام نہيں‬
‫ِ‬
‫وہی گيسو‪ ،‬وہی نظريں ‪ ،‬وہی عارض‪ ،‬وہی جسم‬
‫ميں جو چاہوں تو مجھ ے اور بھی مل سکتے ہيں‬
‫وه کنول جن کو کبھی ان کے ليے کھلنا تھا‬
‫ان کی نظروں سے بہت دور بھی کھل سکتے ہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫کل اور آج‬
‫کل بھی بونديں برسی تھيں‬
‫کل بھی بادل چھائے تھے‬
‫۔۔۔اور کوی نے سوچا تھا‬
‫بادل يہ آکاش کے سپنے ان زلفوں کے سائے ہيں‬
‫دوش ہوا پر ميخانے ہی ميخانے گھر آئے ہيں‬
‫رت بدلے گی پھول کھليں گے جھونکے مدھ برسائيں گے‬
‫ُاجلے ُاجلے کھيتوں ميں رنگين آنچل لہرائيں گے‬
‫چرواہے بنسی کی دھن سے گيت فضا ميں بوئيں گے‬
‫آموں کے جھنڈوں کے نيچے پرديسی دل کھوئيں گے‬
‫پينگ بﮍھاتی گوری کے ماتھے سے کوندے لپکيں گے‬
‫جوہﮍ کے ٹھہرے پانی ميں تارے آنکھيں جھپکيں گے‬
‫الجھی الجھی راہوں ميں وه آنچل تھامے آئيں گے‬
‫دھرتی‪ ،‬پھول ‪ ،‬آکاش ‪ ،‬ستارے سپنا سا بن جائيں گے‬
‫کل بھی بونديں برسی تھيں‬
‫کل بھی بادل چھائے تھے‬
‫اور کوی نے سوچا تھا‬
‫‪2‬‬

‫آج بھی بونديں برسيں گی‬
‫آج بھی بادل چھائے ہيں‬
‫۔۔۔اور کوی اس سوچ ميں ہے‬
‫بستی پر بادل چھائے ہيں پر يہ بستی کس کی ہے‬
‫دھرتی پر امرت برسے گا ليکن دھرتی کس کی ہے‬
‫ہل جوتے گی کھيتوں ميں الہﮍ ٹولی دہقانوں کی‬
‫دھرتی سے پھوٹے گی محنت فاقہ کش انسانوں کی‬
‫فصليں کاٹ کے محنت کش غ ل ّ◌ ے کے ڈھير لگائيں گے‬
‫جاگيروں کے مالک آکر سب پونجی لے جائيں گے‬
‫بوڑھے دہقانوں کے گھر ‪ ،‬بنيے کی قرقی آئے گی‬
‫اور قرضے کے سود ميں کوئی گوری بيچی جائے گی‬
‫آج بھی جنتا بھوکی ہے کل بھی جنتا ترسی تھی‬
‫آج بھی رم جھم برکھا ہوگی کل بھی بارش برسی تھی‬
‫آج بھی بادل چھائے ہيں‬
‫آج بھی بونديں برسيں گی‬
‫۔۔۔۔اور کوئی اس سوچ ميں ہے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ہراس‬
‫تيرے ہونٹوں پہ تبسم کی وه ہلکی سی لکير‬
‫ميرے تخ ئ يل ميں ره ره کے جھلک اٹھتی ہے‬
‫يوں اچانک ترے عارض کا خيال آتا ہے‬
‫جيسے ظلمت ميں کوئی شمع بھﮍک اٹھتی ہے‬
‫پيراہن رنگيں کی جنوں خيز مہک‬
‫تيرے‬
‫ِ‬
‫خواب بن بن کے مرے ذہن ميں لہراتی ہے‬
‫رات کی سرد خموشی ميں ہر اک جھونکے سے‬
‫ترے انفاس‪ ،‬ترے جسم کی آنچ آتی ہے‬
‫ميں سلگتے ہوئے رازوں کو عياں تو کردوں‬
‫ليکن ان رازوں کی تشہير سے جی ڈرتا ہے‬

‫رات کے خواب اجالے ميں بياں تو کردوں‬
‫ان حسی ں خوابوں کی تعبير سے جی ڈرتا ہے‬
‫تيری سانسوں کی تھکن‪ ،‬تيری نگاہوں کا سکوت‬
‫درحقيقت کوئی رنگين شرارت ہی نہ ہو‬
‫ميں جسے پيار کا انداز سمجھ بيٹھا ہوں‬
‫وه تبسم‪ ،‬وه تکلم تری عادت ہی نہ ہو‬
‫سوچتا ہوں کہ تجھے مل کے ميں جس سوچ ميں ہوں‬
‫پہلے اس سوچ کا مقسوم سمجھ لوں تو کہوں‬
‫ميں ترے شہر ميں انجان ہوں پرديسی ہوں‬
‫تيرے الطاف کا مفہوم سمجھ لوں تو کہوں‬
‫کہيں ايسا نہ ہو پا ؤ ں مرے تھر ّ◌ ا جائيں‬
‫اور تری مرمريں بانہوں کا سہارا نہ ملے‬
‫اشک بہتے رہيں خاموش سيہ راتوں ميں‬
‫اور ترے ريشمی آ نچل کا کنارا نہ ملے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫اسی دوراہے پر‬
‫اب نہ ُان اونچے مکانوں ميں قدم رکھوں گا‬
‫ميں نے اک بار يہ پہلے بھی قسم کھائی تھی‬
‫اپنی نادار محبت کی شکستوں کے طفيل‬
‫زندگی پہلے بھی شرمائی تھی جھنجالئی تھی‬
‫اوريہ عہد کيا تھا کہ بہ ايں حال تباه‬
‫اب کبھی پيار بھرے گيت نہيں گا ؤ ں گا‬
‫کسی چلمن نے پکارا بھی تو بﮍھ جا ؤ ں گا‬
‫کوئی دروازه کھال بھی تو پلٹ آ ؤ ں گا‬
‫پھر ترے کانپتے ہونٹوں کی فسوں کار ہنسی‬
‫جال بننے لگی‪ ،‬بنتی رہی‪ ،‬بنتی ہی رہی‬
‫ميں کھنچا تجھ سے ‪ ،‬مگر تو مری راہوں کے ليے‬

‫پھول چنتی رہی‪ ،‬چنتی رہی‪ ،‬چنتی ہی رہی‬
‫برف برسائی مرے ذہن و تصور نے مگر‬
‫دل ميں اک شعلۂ بے نام سا لہرا ہی گيا‬
‫تيری چپ چاپ نگاہوں کو سلگتے پا کر‬
‫ميری بيزار طبيعت کو بھی پيار آ ہی گيا‬
‫اپنی بدلی ہوئی نظروں کے تقاضے نہ چھپا‬
‫ميں اس انداز کا مفہوم سمجھ سکتا ہوں‬
‫تيرے زرکار دريچوں کی بلندی کی قسم‬
‫اپنے اقدام کا مقسوم سمجھ سکتا ہوں‬
‫اب نہ ُان اونچے مکانوں ميں قدم رکھوں گا‬
‫ميں نے اک بار يہ پہلے بھی قسم کھائی تھی‬
‫اسی سرمايہ و افالس کے دوراہے پر‬
‫زندگی پہلے بھی شرمائی تھی جھنج ھ الئی تھی‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫تصوير رنگ‬
‫ايک‬
‫ِ‬
‫ميں نے جس وقت تجھے پہلے پہل ديکھا تھا‬
‫تو جوانی کا کوئی خواب نظرآئی تھی‬
‫حسن کا نغمۂ جاويد ہوئی تھی معلوم‬
‫عشق کا جذبۂ بے تاب نظر آئی تھی‬
‫اے طرب زار جوانی کی پريشا ں تتلی‬
‫تو بھی اک بوئے گرفتار ہے معلوم نہ تھا‬
‫تيرے جلو ؤ ں ميں بہاريں نظر آتی تھيں مجھے‬
‫ستم خوردۀ ادبار ہے معلوم نہ تھا‬
‫تو ِ‬
‫تيرے نازک سے پروں پر يہ زروسيم کا بوجھ‬
‫تيری پرواز کو آزار نہ ہونے دےگا‬
‫تو نے راحت کی تمنا ميں جو غم پاال ہے‬
‫وه تری روح کو آباد نہ ہونے دے گا‬

‫تو نے سرمائے کی چھا ؤ ں ميں پنپنے کے ليے‬
‫اپنے‪ ،‬دل اپنی محبت کا لہو بيچا ہے‬
‫تزئين فسرده کا اثاثہ لے کر‬
‫دن کی‬
‫ِ‬
‫شوخ راتوں کی مسرت کا لہو بيچا ہے‬
‫زخم خورده ہيں تخيل ک ی اڑانيں تيری‬
‫تيرے گيتوں ميں تری روح کے غم پلتے ہيں‬
‫سرمگيں آنکھوں ميں يوں حسرتيں ل َ◌ و ديتی ہيں‬
‫جيسے ويران مزاروں پہ ديے جلتے ہيں‬
‫اس سے کيا فائده ؟ رنگين لبادوں کے تلے‬
‫روح جلتی رہے‪ ،‬گھلتی رہے‪ ،‬پژمرده رہے‬
‫ہونٹ ہنستے ہوں دکھاوے کے تبسم کے ليے‬
‫غم زيست سے بوجھل رہے ‪ ،‬آزرده رہے‬
‫دل ِ‬
‫آسائش ہستی کی دليل‬
‫دل کی تسکن بھی ہے‬
‫ِ‬
‫زندگی صرف زروسيم کا پيمانہ نہيں‬
‫ست احساس بھی ہے‪ ،‬شوق بھی ہے‪ ،‬درد بھی ہے‬
‫زي ِ‬
‫صرف انفاس کی ترتيب کا افسانہ نہيں‬
‫عمر بھر رينگے رہنے سے کہيں بہتر ہے‬
‫ايک لمحہ جو تری روح ميں وسعت بھر دے‬
‫ايک لمحہ جو ترے گيت کو شوخی دے دے‬
‫ايک لمحہ جو تيری ل َ◌ ے ميں مسرت بھر دے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ايک شام‬
‫قمقموں کی زہر اگلتی روشنی‬
‫سنگ دل پر ہول ديواروں کے سائے‬
‫آہنی بت‪ ،‬ديو پيکر اجنبی‬
‫چيختی چنگھاڑتی خونيں سرائے‬

‫روح الجھی جارہی ہے کيا کروں‬
‫ارتعاش رنگ و نور‬
‫چار جانب‬
‫ِ‬
‫چار جانب اجنبی بانہوں کے جال‬
‫چار جانب خوں فشاں پرچم بلند‬
‫دست سوال‬
‫ميں‪ ،‬مری غيرت‪ ،‬مرا‬
‫ِ‬
‫زندگی شرما رہی ہے کيا کروں‬
‫گاه زيست کے ہر موڑ پر‬
‫گار ِ‬
‫روح چنگيزی برافگنده نقاب‬
‫جہان نو کی ضوء‬
‫تھام اے صبح‬
‫ِ‬
‫مستقبل انساں کے خواب‬
‫جاگ اے‬
‫ِ‬
‫آس ڈوبی جارہی ہے کيا کروں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫احساس کامراں‬
‫ِ‬
‫افق روس سے پ ھوٹی ہے نئی صبح کی ضو‬
‫ِ‬
‫شب کا تاريک جگر چاک ہوا جاتا ہے‬
‫تيرگی جتنا سنبھلنے کے ليے رکتی ہے‬
‫سرخ سيل اور بھی بے باک ہوا جاتا ہے‬
‫سامراج اپنے وسيلوں پہ بھروسہ نہ کرے‬
‫کہنہ زنجيروں کی جھنکاريں نہيں ره سکتيں‬
‫نصرت جمہور کی بﮍھتی رو ميں‬
‫جذب ۀ‬
‫ِ‬
‫ملک اور قوم کی ديواريں نہيں ره سکتيں‬
‫سنگ و آہن کی چٹانيں ہيں عوامی جذبے‬
‫موت کے رينگتے سايوں سے کہو ہٹ جائيں‬
‫سيل انوار‬
‫کروٹيں لے کے مچلنے کو ہے ِ‬

‫تيره و تار گھٹا ؤ ں سے کہو چھٹ جائيں‬
‫سالہا سال کے بے چين شراروں کا خروش‬
‫اک نئی زيست کا درباز کيا چاہتا ہے‬
‫عزم آزادئ انساں‪ ،‬پہ ہزاروں جبروت‬
‫ِ‬
‫اک نئے دورکا آغاز کيا چاہتا ہے‬
‫برتر اقوام کے مغرور خدا ؤ ں سے کہو‬
‫آخری بار ذرا اپنا ترانہ د ه رائيں‬
‫اور پھر اپنی سياست پہ پيشماں ہو کر‬
‫اپنے ناکام ارادوں کا کفن لے آئيں‬
‫سرخ طوفان کی موجوں کو جکﮍنے کے ليے‬
‫کوئی زنجير ِگراں کام نہيں آسکتی‬
‫رقص کرتی ہوئی کرنوں کے تالطم کی قسم‬
‫عرص ۀ دہر پہ اب شام نہيں چھا سکتی‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ميرے گيت تمہارے ہيں‬
‫اب تک ميرے گيتوں ميں اميد بھی تھی پسپائی بھی‬
‫موت کے قدموں کی آہٹ بھی جيون کی انگﮍائی بھی‬
‫مستقبل کی کرنيں بھی تھيں حال کی بوجھل ظلمت بھی‬
‫طوفانوں کا شور بھی تھا اور خوابوں کی شہنائی بھی‬
‫آج سے ميں اپنے گيتوں ميں آتش پارے بھر دوں گا‬
‫مدہم‪ ،‬لچکيلی تانوں ميں جيوٹ دھارے بھردوں گا‬
‫جيون کے اندھيارے پتھ پر مشعل لے کرنکلوں گا‬
‫دھرتی کے پھيلے آنچل ميں سرخ ستارے بھر دوں گا‬
‫آج سے اے مزدور کسانو! ميرے گيت تمہارے ہيں‬
‫فاقہ کش انسانو! ميرے جوگ بہاگ تمہارے ہيں‬
‫جب تک تم بھوکے ننگے ہو‪ ،‬يہ نغمے خاموش نہ ہونگے‬

‫جب تک بے آالم ہوتم يہ نغمے راحت کوش نہ ہونگے‬
‫مجھ کو اس کا رنج نہيں ہے لوگ مجھے فنکار نہ مانيں‬
‫فکر و فن کے تاجر ميرے شعروں کو اشعار نہ مانيں‬
‫ميرا فن ميری اميديں ‪ ،‬آج سے تم کو ارپن ہيں!‬
‫آج سے ميرے گيت تمہارے دکھ اور سکھ کا درپن ہيں‬
‫تم سے قوت لے کر اب ميں تم کو ره دکھال ؤ ں گا‬
‫تم پرچم لہرانا ساتھی ميں بربط پر گا ؤ ں گا‬
‫آج سے ميرے فن کا مقصد زنجيريں پگھالنا ہے‬
‫آج سے ميں شبنم کے بدلے انگارے برسا ؤ ں گا‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫اپنی تباہی کا مجھے کوئی غم نہيں‬
‫تم نے کسی کے ساتھ محبت نبھا تو دی‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ميں نہيں تو کيا؟‬
‫مرے ليے يہ تکلف‪ ،‬يہ دکھ ‪،‬يہ حسرت کيوں‬
‫نگاه طلب‪ ،‬آخری نگاه نہ تھی‬
‫مری ِ‬
‫زار جہاں کی طويل راہوں ميں‬
‫حيات ِ‬
‫ہزار ديدۀ حيراں فسوں بکھيريں گے‬
‫دست سوال‬
‫ہزار چشم تمنا بنے گی‬
‫ِ‬
‫خلوت غم سے نظر ُاٹھا ؤ تو‬
‫نکل کے‬
‫ِ‬
‫وہی شفق ہے‪ ،‬وہی ضو ہے‪ ،‬ميں نہيں تو کيا؟‬
‫کامياب عشرت تھيں‬
‫مرے بغير بھی تم‬
‫ِ‬
‫مرے بغير بھی آباد تھے نشاط کدے‬
‫مرے بغير بھی تم نے ديے جالئے ہيں‬

‫مرے بغير بھی ديکھا ہے ظلمتوں کا نزول‬
‫مرے نہ ہونے سے اميد کا زياں کيوں ہو‬
‫بﮍھی چلو مئے عشرت کا جام چھلکاتی‬
‫تمہاری سيج‪ ،‬تمہارے بدن کے پھولوں پر‬
‫اسی بہار کا پرتو ہے‪ ،‬ميں نہيں تو کيا؟‬
‫مرے ليے يہ اداسی‪ ،‬يہ سوگ کيوں آخر‬
‫گرد فسردگی کيسی‬
‫مليح چہرے پہ ِ‬
‫بہار غازه سے عارض کو تازگی بخشو‬
‫ِ‬
‫عليل آنکھوں ميں کاجل لگا ؤ رنگ بھرو‬
‫سياه جوڑے ميں کليوں کی کہکشاں گوندھو‬
‫ہزار ہاہنپتے سينے ہزار کانپتے لب‬
‫چشم توج ّ◌ ه کے منتظر ہيں ابھی‬
‫تمہاری‬
‫ِ‬
‫جلو ميں نغمہ و رنگ و بہارو نور ليے‬
‫گرم تگ و دو ہے‪ ،‬ميں نہيں تو کيا‬
‫حيات ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫خود کشی سے پہلے‬
‫ُاف يہ بے درد سياہی يہ ہوا کے جھونکے‬
‫کس کو معلوم ہے اس شب کی سحر ہو کہ نہ ہو‬
‫اک نظر تيرے دريچے کی طرف ديکھ تو لوں‬
‫تاب نظر ہو کہ نہ ہو‬
‫ڈوبتی آنکھوں ميں پھر ِ‬
‫ابھی روشن ہيں ترے گرم شبستاں کے ديے‬
‫نيلگوں پردوں سے چھنتی ہيں شعائيں اب تک‬
‫اجنبی بانہوں کے حلقے ميں لچکتی ہوں گی‬
‫تيرے مہکے ہوئے بالوں کی ر د ائيں اب تک‬
‫سرد ہوتی ہوئی بتی کے دھوئيں کے ہمراه‬
‫ہاتھ پھيالئے بﮍھے آتے ہيں بوجھل سائے‬
‫کون پونچھے مری آنکھوں کے سلگتے آنسو‬

‫کون الجھے ہوئے بالوں کی گره سلجھائے‬
‫غار ہالکت‪ ،‬يہ ديے کا مجلس‬
‫آه يہ ِ‬
‫عمر اپنی انہی تاريک مکانوں ميں کٹی‬
‫زندگی فطرت بے حسن کی پرانی تقصير‬
‫اک حقيقت تھی مگر چند فسانوں ميں کٹی‬
‫کتنی آسائشيں ہنستی رہيں ايوانوں ميں‬
‫کتنے در ميری جوانی پہ سدا بند رہے‬
‫کتنے ہاتھوں نے بنا اطلس و کمخواب مگر‬
‫ميرے ملبوس کی تقدير ميں پيوند رہے‬
‫ظلم سہتے ہوئے انسانوں کے اس مقتل ميں‬
‫کوئی فردا کے تصور سے کہاں تک بہلے‬
‫عمر بھر رينگتے رہنے کی سزا ہے جينا‬
‫ايک دو دن کی اذيت ہو تو کوئی سہہ لے‬
‫وہی ظلمت ہے فضا ؤ ں پہ ابھی تک طاری‬
‫جانے کب ختم ہو انساں کے لہو کی تقطير‬
‫جانے کب نکھرے سيہ پوش فضا کا جوبن‬
‫جانے کب جاگے ستم خورده بشر کی تقدير‬
‫ابھی روشن ہيں ترے گرم شبستاں کے ديے‬
‫آج ميں موت کے غاروں ميں اتر جا ؤ ں گا‬
‫اور دم توڑتی بتی کے دھوئيں کے ہمراه‬
‫سرحد مرگِ مسلسل سے گزر جاؤں گا‬
‫ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫کنج قفس‬
‫پھر وہی ِ‬
‫چند لمحوں کے ليے شور اٹھا ڈوب گيا‬
‫زنجير غالمی کی گره کٹ نہ سکی‬
‫کہنہ‬
‫ِ‬
‫دام امواج‬
‫سيل بال‪ ،‬وہی ِ‬
‫پھر وہی ِ‬

‫ناخداوں ميں سفينے کی جگہ بٹ نہ سکی‬
‫ٹوٹتے ديکھ کے ديرينہ تعلطل کا فسوں‬
‫اميد وطن ابھری‪ ،‬مگر ڈوب گئی‬
‫ِ ِ‬
‫نبض◌ ِ‬
‫پيشواوں کی نگاہوں ميں تذبذب پاکر‬
‫ٹوٹتی رات کے سائے ميں سحر ڈوب گئی‬
‫ميرے محبوب وطن! تيرے مقدر کے خدا‬
‫دست اغيار ميں قمست کے عناں چھوڑ گئے‬
‫ِ‬
‫اپنی يک طرفہ سياست کے تقاضوں کے طفيل‬
‫ايک بار اور تجھے نوحہ کناں چھوڑ گئے‬
‫پھر وہی گوشۂ زنداں ہے ‪ ،‬وہی تاريکی‬
‫پھر وہی کہنہ سالسل‪ ،‬وہی خونيں جھنکار‬
‫پھر وہی بھوک سے انساں کی ستيزه کاری‬
‫پھر وہی ما ؤ ں کے نوحے‪ ،‬وہی بچوں کی پکار‬
‫تيرے رہبر تجھے مرنے کے ليے چھوڑ چلے‬
‫ارض بنگال! انھيں ڈوبتی سانسوں کی پکار‬
‫ِ‬
‫بول! چٹگا ؤ ں کی مظلوم خموشی کچھ بول‬
‫بول اے پيپ سے رستے ہوئے سينوں کی بہار‬
‫بھوک اور قحط کے طوفان بﮍھے آتے ہيں‬
‫بول اے عصمت و عفت کے جنازوں کی قطار‬
‫روک ان ٹوٹتے قدموں کو انھيں پوچھ ذرا‬
‫بوچھ اے بھوک سے دم توڑتے ڈھانچوں کی قطار‬
‫زندگی جبر کے سانچوں ميں ڈھلے گی کب تک‬
‫ان فضا أ ں ميں ابھی موت پلے گی کب تک‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫اشعار‬
‫نفس کے لوچ ميں رم ہی نہيں کچھ اور بھی ہے‬

‫حيات‪ ،‬ساغر سم ہی نہيں کچھ اور بھی ہے‬
‫تری نگاه مرے غم کی پاسدار سہی‬
‫مری نگاه ميں غم ہی نہيں کچھ اور بھی ہے‬
‫مری نديم! محبت کی رفعتوں سے نہ گر‬
‫بام حرم ہی نہيں کچھ اور بھی ہے‬
‫بلند ِ‬
‫شعور محبوبی‬
‫س‬
‫يہ اجتناب ہے عک ِ‬
‫ِ‬
‫احتياط ستم ہی نہيں کچھ اور بھی ہے‬
‫يہ‬
‫ِ‬
‫ادھر بھی ايک اچٹتی نظر کہ دنيا ميں‬
‫محفل جم ہی نہيں کچھ اور بھی ہے‬
‫فروغ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫فکر آدم نے‬
‫نئے جہان بسائے ہيں ِ‬
‫اب اس زميں پہ ارم ہی نہيں کچھ اور بھی ہے‬
‫مرے شعور کو آواره کر ديا جس نے‬
‫وه مرگِ شادی و غم ہی نہيں‪ ،‬کچھ اور بھی ہے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫نور جہاں کے مزار پر‬
‫دختر جمہور کی قبر‬
‫پہلوئے شاه ميں‬
‫ِ‬
‫کتنے گم گشتہ فسانوں کاپتہ ديتی ہے‬
‫کتنے خوں ريز حقائق سے اٹھاتی ہے نقاب‬
‫کتنی کچلی ہوئی جانوں کا پتہ ديتی ہے‬
‫کيسے مغرور شہنشاہوں کی تسکيں کے ليے‬
‫سالہا سال حسينا ؤ ں کے بازار لگے‬
‫کيسے بہکی ہوئی نظروں کے تعيش کے ليے‬
‫سرخ محلوں ميں جواں جسموں کے انبار لگے‬
‫کيسے ہر شاخ سے منہ بند مہکتی کلياں‬

‫نوچ لی جاتی تھيں تزئين حرم کی خاطر‬
‫اور مرجھا کے بھی آزاد نہ ہو سکتی تھيں‬
‫ظل سبحان کی الفت کے بھرم کی خاطر‬
‫کيسے اک فرد کے ہونٹوں کی ذرا سی جنبش‬
‫سرد کر سکتی تھی بے لوث وفا ؤ ں کے چراغ‬
‫لوٹ سکتی تھی دمکتے ہوئے ہاتھوں کا سہاگ‬
‫توڑ سکتی تھی مئے عشق سے لبريز اياغ‬
‫سہمی سہمی سی فضا ؤ ں ميں يہ ويراں مرقد‬
‫اتنا خاموش ہے فرياد کناں ہو جيسے‬
‫سرد شاخوں ميں ہوا چيخ رہی ہے ايسے‬
‫روح تقديس و وفا مرثيہ خواں ہو ج ی سے‬
‫ِ‬
‫تو مری جان! مجھے حيرت و حسرت سے نہ ديکھ‬
‫ہم ميں کوئی بھی جہاں نور و جہاں گير نہيں‬
‫تو مجھے چھوڑ کے ٹھکرا کے بھی جا سکتی ہے‬
‫تيرے ہاتھوں ميں مرے ہاتھ ہيں زنجير نہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫جاگير‬
‫پھر ُاسی وادئ شاداب ميں لوٹ آيا ہوں‬
‫جس ميں پنہاں مرے خوابوں کی طرب گاہيں ہيں‬
‫سامان تعيش کے ليے‬
‫ميرے احباب کے‬
‫ِ‬
‫شوخ سينے ہيں‪ ،‬جواں جسم حسيںبانہيں ہيں‬
‫سبز کھتوں ميں يہ دہکی ہوئی دوشيزائيں‬
‫ان کی شريانوں ميں کس کس کا لہو جاری ہے‬
‫کس ميں جر أ ت ہے کہ اس راز کی تشہير کرے‬
‫سب کے لب پر مری ہيبت کا فسوں طاری ہے‬
‫ہائے وه گرم و دل آويز ابلتے سينے‬
‫سطوت آبا کاصلہ ليتے ہيں‬
‫جن سے ہم‬
‫ِ‬

‫جانے ان مرمريں جمسوں کو يہ مريل دہقاں‬
‫کيسے ان تيره گھرندوں ميں جنم ديتے ہيں‬
‫يہ لہکتے ہوئے پودے‪ ،‬يہ دمکتے ہوئے کھيت‬
‫پہلے اجداد کی جاگير تھے اب ميرے ہيں‬
‫يہ چراگاه‪ ،‬يہ ريوڑ‪ ،‬يہ مويشی يہ کساں‬
‫سب کے سب ميرے ہيں‪ ،‬سب ميرے ہيں‪ ،‬سب ميرے ہيں‬
‫ان کی محنت بھی مری‪ ،‬حاصل محنت بھی مرا‬
‫قوت بازو بھی مری‬
‫ان کے بازو بھی مرے‬
‫ِ‬
‫وسعت بے پاياں کا‬
‫ميںخداوند ہوں ُاس‬
‫ِ‬
‫نکہت گيسو بھی مری‬
‫موج عارض بھی مری‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ميں ان اجداد کا بيٹا ہوں جنہوں نے پيہم‬
‫اجنبی قوم کے سائے کی حمايت کی ہے‬
‫ساعت ناپاک سے لے کر اب تک‬
‫عذر کی‬
‫ِ‬
‫ہر کﮍے وقت ميں سرکار کی خدمت کی ہے‬
‫خاک پر رينگنے والے يہ فسرده ڈھانچے‬
‫ان کی نظريں کبھی تلوار بنی ہيں نہ بنيں‬
‫ان کی غيرت پہ ہر اک ہاتھ چھپٹ سکتا ہے‬
‫ان کے ابرو کی کمانيں نہ تنی ہيں نہ تنيں‬
‫ہائے يہ شام‪ ،‬يہ جھرنے ‪ ،‬يہ شفق کی اللی‬
‫ہيں ان آسوده فضا ؤ ں ميں ذرا جھوم نہ لوں‬
‫وه د ب ے پا ؤ ں ادھر کون چلی جاتی ہے‬
‫بﮍھ کے اس شوخ کے ترشے ہوئے لب چوم نہ لوں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫مادام‬
‫آپ بے وجہ پريشاں سی کيوں ہيں مادام‬
‫لوگ کہتے ہيں تو پھر ٹھيک ہی کہتے ہوں گے‬
‫ميرے احباب نے تہذيب نہ سيکھی ہوگی‬

‫ميرے ماحول ميں انسان نہ رہتے ہوں گے‬
‫نور سرمايہ سے ہے روئے تمدن کی جال‬
‫ِ‬
‫ہم جہاں ہيں وہاں تہذيب نہيں پل سکتی‬
‫حس لطافت کو مٹا ديتی ہے‬
‫مفلسی‬
‫ِ‬
‫بھوک آداب کے سانچوں ميں نہيںڈھل سکتی‬
‫لوگ کہتے ہيں تو لوگوں کو تعجب کيسا‬
‫سچ تو کہتے ہيں کہ ناداروں کی عزت کيسی‬
‫لوگ کہتے ہيں‪ ،‬مگر آپ ابھی تک چپ ہيں‬
‫آپ بھی کہيئے‪ ،‬غريبوں کی شرافت کيسی‬
‫نيک مادام! بہت جلد وه دور آئے گا‬
‫جب ہميں زيست کے ادوار پرکھنے ہوںگے‬
‫اپنی ذلت کی قسم‪ ،‬آپ کی عظمت کی قسم‬
‫ہم کو تعظيم کے معيار پرکھنے ہوں گے‬
‫ہم نے ہر دور ميںتذليل سہی ہے ليکن‬
‫ہم نے ہر دور کے چہرے کو ضيا بخشی ہے‬
‫ہم نے ہر دور ميں محنت کے ستم جھيلے ہيں‬
‫ہم نے ہر دور کے ہاتھوں کو حنا بخشی ہے‬
‫ليکن اس تلخ مباحث سے بھال کياحاصل‬
‫لوگ کہتے ہيں تو پھر ٹھيک ہی کہتے ہوں گے‬
‫ميرے احباب نے تہذيب نہ سيکھی ہوگی‬
‫ميں جہاں ہوں وہاں انسان نہ رہتے ہوں گے‬
‫وج ِه بے رنگ ئ گلزار کہوں يا نہ کہوں!!‬
‫کون ہے کتنا گنہگار کہوں يا نہ کہوں!!‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫مفاہمت‬
‫نشب ارض پہ ذروں کو مشتعل پا کر‬
‫ِ‬

‫بلنديوں پہ سفيد و سياه مل ہی گئے‬
‫جو يادگار تھے باہم ستيزه کاری کی‬
‫فيض وقت وه دامن کے چاک سل ہی گئے‬
‫بہ‬
‫ِ‬
‫جہاد ختم ہوا دور آتشی آيا!‬
‫سنبھل کے بيٹھ گئے محملوں ميں ديوانے‬
‫ہجوم تشنہ لباں کی نگاه اوجھل‬
‫چھلک رہے ہيں شراب ہوس کے پيمانے‬
‫شن مسرت نہيں تماشا ہے‬
‫يہ ج شن‪ ،‬ج ِ‬
‫نئے لباس ميں نکال ہے رہزنی کا جلوس‬
‫ہزار شمع اخوت بجھا کے چمکے ہيں‬
‫يہ تيرگی کے ابھارے ہوئے حسی ں فانوس‬
‫شاخ نور جسے ظلمتوں نے سينچا ہے‬
‫يہ‬
‫ِ‬
‫اگر پھلی تو شراروں کے پھول الئے گی‬
‫فصل گل کے آنے تک‬
‫يہ پھل سکی تو نئی‬
‫ِ‬
‫ضمير ارض ميں اک زہر چھوڑ جائے گی‬
‫ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫آج‬
‫ساتھيو! ميں نے برسوں تمہارے ليے‬
‫چاند‪ ،‬تاروں‪،‬بہاروں کے سپنے بنے‬
‫حسن اورعشق کے گيت گاتا رہا‬
‫آرزوں کے ايواں سجاتا رہا‬
‫ميں تمہارا مغنی تمہارے ليے‬
‫جب بھی آيا نئے گيت گاتا رہا‬
‫دامن چاک ميں‬
‫آج ليکن مرے‬
‫ِ‬
‫راه سفر کے سوا کچھ نہيں‬
‫گرد ِ‬
‫ِ‬
‫ميرے بربط کے سينے ميں نغموں کا دم گھٹ گيا‬

‫تانيں چيخوں کے انبار ميں دب گئيں‬
‫اورگيتوں کے سر ہچکياں بن گئے ہيں‬
‫ميں تمہارا مغنی ہوں‪ ،‬نغمہ نہيں ہوں‬
‫اور نغمے کی تخليق کا سازو ساماں‬
‫ساتھيو! آج تم نے بھسم کر ديا ہے‬
‫اور ميں اپنا ٹوٹا ہوا ساز تھامے‬
‫سرد الشوں کے انبار کو تک رہا ہوں‬
‫ميرے چاروں طرف موت کی وحشتيں ناچتی ہيں‬
‫اور انساں کی حيوانيت جاگ اٹھی ہے‬
‫بربريت کے خوں خوار عفريت‬
‫اپنے ناپاک جبﮍوں کو کھولے‬
‫خون پی پی کے غرا رہے ہيں‬
‫بچھے ما ؤ ں کی گودوں ميں سہمے ہوئے ہيں‬
‫عصمتيں سربرہنہ پريشاں ہيں‬
‫شور آه و بکا ہے‬
‫ہر طرف‬
‫ِ‬
‫اور ميں اس تباہی کے طوفاں ميں‬
‫آگ اور خوں کے ہيجان ميں‬
‫سرنگوںاور شکستہ مکانوں کے ملبے سے پر راستوں پر‬
‫اپنے نغموں کی جھولی پسارے‬
‫دربدر پھر رہا ہوں!‬
‫مجھ کو امن اور تہذيب کی بھيک دو‬
‫ميری گيتوں کی لے‪ ،‬ميرا سر ‪ ،‬ميری نے‬
‫ميرے مجروح ہونٹوں کو پھر سونپ دو‬
‫ساتھيو! ميں نے برسوں تمہارے ليے‬
‫انقالب اور بغاوت کے نغمے االپے‬
‫اجنبی راج کے ظلم کی چھا ؤ ں ميں‬
‫سرفروشی کے خوابيده جذبے ابھارے‬
‫اوراس صبح کی راه ديکھی!‬
‫جس ميںاس ملک کی روح آزاد ه و‬
‫آج زنجير محکوميت کٹ چکی ہے‬
‫اور اس ملک کے بحروبر بام و در‬
‫اجنبی قوم کے ظلمت افشاں پھريرے کی منحوس چھا ؤ ں سے آزاد ہيں‬

‫کھيت سونا اگلنے کو بے چين ہيں‬
‫وادياں لہلہانے کو بے تاب ہيں‬
‫کوہساروں کے سينے ميں ہيجان ہے‬
‫سنگ اور خشت بے خواب وبيدار ہيں‬
‫ان کی آنکھوں ميںتعمر کے خواب ہيں‬
‫ان کے خوابوںکو تکميل کا روپ دو‬
‫ملک کی وادياں‪ ،‬گھاٹياں‪ ،‬کھيتياں‬
‫عورتيں بچياں‬
‫ہاتھ پھيالئے خيرات کی منتظر ہيں‬
‫ان کو امن اور تہذيب کی بھيک دو‬
‫ما ؤ ں کو ان کے ہونٹوں کی شادابياں‬
‫ننھے بچوں کوان کی خوشی بخش دو‬
‫مجھ کو مير ا ہنر ميری لے بخش دو‬
‫آج ساری فضا ہے بھکاری‬
‫اور ميں اس بھکاری فضا ميں‬
‫اپنے نغموں کی جھولی پسارے‬
‫دربدر پھر رہا ہوں‬
‫مجھ کو پھر ميرا کھويا ہوا ساز دو‬
‫ميں تمہار ا مغنی تمہارے ليے‬
‫جب بھی آيا نئے گيت التا رہوں گا‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫طرب زاروں پہ کيا بيتی صنم خانوں پہ کيا گزری‬
‫دل زنده! تيرے مرحوم ارمانوں پہ کيا گزری‬
‫ِ‬
‫زميں نے خون اگال آسماں نے آگ برسائی‬
‫جب انسانوں کے دل بدلے تو انسانوں پہ کيا گزری‬
‫ہميں يہ فکر ُان کی انجمن کس حال ميں ہوگی‬
‫انھيں يہ غم کہ ُان سے چھ ُ◌ ٹ کے ديوانوں پہ کيا گزری‬
‫ميرا الحاد تو خير ايک لعنت تھا سو ہے اب تک‬

‫عالم وحشت ميں ايمانوں پہ کيا گزری‬
‫مگر اس ِ‬
‫يہ منظر کون سا منظر ہے پہچانا نہيں جاتا‬
‫سيہ خانوں سے کچھ پوچھو شبستانوں پہ کيا گزری‬
‫چلو وه کفر کے گھر سے سالمت آگئے ليکن‬
‫خدا کی مملکت ميں سوختہ جانوں پہ کيا گزری‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫نيا سفر ہے پرانے چراغ گل کردو‬
‫جنت فردا کے جال ٹوٹ گئے‬
‫فريب‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫حيات اپنی اميدوں پہ شرمسار سی ہے‬
‫درود بہار ہو بھی چکا‬
‫چمن ميں جشن و‬
‫ِ‬
‫نگاه گل و اللہ سوگوار سی ہے‬
‫مگر ِ‬
‫فضا ميں گرم بگولوں کا رقص جاری ہے‬
‫افق پہ خون کی مينا چھک رہی ہے ابھی‬
‫کامہر منور کہاں کی تنويريں‬
‫کہاں‬
‫ِ‬
‫کہ بام و در پہ سياہی جھلک رہی ہے ابھی‬
‫ابن آدم نے‬
‫فضائيں سوچ رہی ہيں کہ ِ‬
‫خرد گنوا کے جنوں آزما کے کيا پايا‬
‫غم ايام!‬
‫وہی‬
‫ِ‬
‫شکست تمنا وہی ِ‬
‫نگار زيست نے سب کچھ لٹا کے کيا پايا‬
‫ِ‬
‫ب ھٹک کے ره گئيں نظريں خال کی وسعت ميں‬
‫شاہد رعنا کا کچھ پتہ نہ مال‬
‫حريم‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫طويل راه گزر خ ت م ہو گئی ليکن‬
‫ہنوز اپنی مسافت کا منتہا نہ مال‬
‫سفر نصيب رفيقو! قدم بﮍھائے چلو‬
‫پرانے ر ا ہنما لوٹ کر نہ ديکھيں گے‬
‫طلوع صبح سے تاروں کی موت ہوتی ہے‬
‫ِ‬

‫شبوں کے راج دالرے ادھر نہ ديکھيں گے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫شکست زنداں‬
‫ِ‬
‫چينی شاعر يانگ سو کے نام جس نے چيانک کائی شيک کے جيل ميں لکھا تھا بيس‬
‫سال قيد کاغذ کے ايک پرزے پر لکھے ہو ۓ چند الفاظ کی بنا پر ہو سکتا ہے کہ‬
‫ميں بيس سال تک سورج کی شکل نہ ديکھ سکوں‪ ،‬ليکن کيا تمہارا فرسوده نظام جو‬
‫لمحہ بہ لمحہ بجلی کی سی تيزی کے ساتھ اپنی موت کی طرف بﮍھ رہا ہے۔ بيس‬
‫سال تک زنده ره سکے گا‬
‫خبر نہيں کہ بال خانۂ سالسل ميں‬
‫حيات ستم آشنا پہ کيا گزری‬
‫تيری‬
‫ِ‬
‫نگار سحر کی حسرت ميں‬
‫خبر نہيں کہ‬
‫ِ‬
‫چراغ وفا پہ کيا گزری‬
‫تمام رات‬
‫ِ‬
‫مگر وه ديکھ فضا ميں غبار سا ُاٹھا‬
‫وه تيرے سرخ جوانوں کے رہوار آئے‬
‫نظر اٹھا کہ وه تيرے وطن کے محنت کش‬
‫گلے سے کہنہ غالمی کا طوق اتار آئے‬
‫افق پہ صبح بہاراں کی آمد آمد ہے‬
‫فضا ميں سرخ پھريروں کے پھول کھلتے ہيں‬
‫زمين خنده بلب ہے شفيق ماں کی طرح‬
‫کہ اس کی گو د ميں بچھﮍے رفيق ملتے ہيں !‬
‫شکست مجلس و زنداں کا وقت آپہنچا‬
‫ِ‬
‫وه تيرے خواب حقيقت ميں ڈھال آئے ہيں‬
‫نظر ُاٹھا کہ ترے ديس کی فضا ؤ ں پر‬
‫نئی بہار نئی جنتوں کے سائے ہيں‬
‫دريده تن ہے وه قحبائے سيم و زر جس کو‬
‫شاطران کہن‬
‫بہت سنبھال کے الئے تھے‬
‫ِ‬

‫رباب چھيﮍ غزل خواں ہو رقص فرما ہو‬
‫نصرت فن‬
‫جشن‬
‫جشن نصرت محنت ہے‬
‫کہ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ميں تجھ سے دور سہی ليکن اے رفيق مرے‬
‫جہد مستقل کا سالم‬
‫تری وفا کو مری ِ‬
‫ارض با حميت کو‬
‫ترے وطن کو تری‬
‫ِ‬
‫دھﮍکتے کھولتے ہندوستاں کے دل کا سالم‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫لہو نذر دے رہی حيات‬
‫مرے جہاں ميں سمن زار ڈھونڈنے والے‬
‫يہاں بہار نہيں آتشيں بگولے ہيں‬
‫دھنک کے رنگ نہيں سرمئی فضاوں ميں‬
‫افق سے تابہ ُافق پھانسيوں کے جھولے ہيں‬
‫منزل خونبار کی طرف ہيں رواں‬
‫پھر ايک‬
‫ِ‬
‫وه رہنما جو کئی بار راه بھولے ہيں‬
‫ٰ‬
‫دعوی جمہوريت کے پردے ميں‬
‫بلند‬
‫مجلس زنداں ہيں تازيانے ہيں‬
‫فروغ‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫بنام امن ہيں جنگ و جدل کے منصوبے‬
‫ِ‬
‫شور عدل‪ ،‬تفاوت کے کارخانے ہيں‬
‫يہ‬
‫ِ‬
‫دلوں پہ خوف کے پہرے لبوں پہ قفل سکوت‬
‫سروں پہ گرم سالخوں کے شاميانے ہيں‬
‫مگر ہٹے ہيں کہيں جبر اور تشدد س ے‬
‫وه فلسفے کہ جال دے گئے دماغوں کو‬
‫سپاه ستم پيشہ چور کر نہ سکی‬
‫کوئی‬
‫ِ‬
‫بشر کی جاگی ہوئی روح کے اياغوں کو‬
‫قدم قدم پہ لہو نذر دے رہی ہے حيات‬
‫سپاہيوں سے الجھتے ہوئے چراغوں کو‬
‫رواں ہے قافلۂ ارتقائے انسانی‬

‫نظام آتش و آہن کا دل ہالئے ہوئے‬
‫ِ‬
‫بغاوتوں کے دہل بج رہے ہيں چار طرف‬
‫نکل رہے ہيں جواں مشعليں جالئے ہوئے‬
‫ارض جہاں کھولتا سمندر ہے‬
‫تمام‬
‫ِ‬
‫تمام کوه و بياباں ميں تلمالئے ہوئے‬
‫مری صدا کو دبانا تو خير ممکن ہے‬
‫مگر حيات کی للکار‪ ،‬کون روکے گا؟‬
‫فصيل آتش و آہن بہت بلند سہی‬
‫ِ‬
‫بدلتے وقت کی رفتار کون روکے گا؟‬
‫نئے خيال کی پرواز روکنے والے‬
‫نئے عوام کی تلوار کون روکے گا؟‬
‫پناه ليتا ہے جن مجلسوں ميں تيره نظام‬
‫وہيں سے صبح کے لشکر نکلنے والے ہيں‬
‫ابھر رہے ہيں فضا ؤ ں ميں احمريں پرچم‬
‫کنارے مشرق و مغرب کے ملنے والے ہيں‬
‫بزار برق گرے‪ ،‬الکھ آندھياں اٹھيں‬
‫وه پھول کھل کے رہيں گے جو کھلنے والے ہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫جب کبھی ان کی توجہ ميں کمی پائی گئی‬
‫داستان شوق د ه رائی گئی‬
‫ازسر نو‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫بک گئے جب تيرے لب پھر تجھ کو کيا شکوه اگر‬
‫زندگانی باده و ساغر سے بہالئی گئی‬
‫غم دنيا! تجھے کيا علم تيرے واسطے‬
‫اے ِ‬
‫کن بہانوں سے طبعيت ر ا ه پر الئی گئی‬
‫ترک وفا اچھا چلو يوں ہی سہی‬
‫ہم کريں‬
‫ِ‬

‫ترک وفا سے بھی نہ رسوائی گئی‬
‫اور اگر‬
‫ِ‬
‫گرد غم سے بجھ گئے‬
‫کيسے کيسے چشم و عارض ِ‬
‫کيسے کيسے پيکروں کی شان ِ◌ زيبائی گئی‬
‫دل کی دھﮍکن ميں توازن آچال ہے خير ہو‬
‫ميری نظريں بجھ گئيں يا تيری رعنائی گئی‬
‫ُان کا غم ‪ُ ،‬ان کا تصور ان کے شکوے اب کہاں‬
‫اب تو يہ باتيں بھی اے دل ہو گئيں آئی گئيں‬
‫جر أ ت انساں پہ گو تاديب کے پہرے رہے‬
‫فطرت انساں کو کب زنجير پہنائی گئی‬
‫ِ‬
‫عرصۂ ہستی ميں اب تيشہ زنوں کا دور ہے‬
‫رسم چنگيزی ُاٹھی‪ ،‬توقير دارائی گئی!‬
‫ِ‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫آواز آدم‬
‫ِ‬
‫آواز آدم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫دبے گی کب تلک‬
‫ِ‬
‫رکيں گے کب تلک جذبات برہم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫جور پيہم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫چلو يونہی سہی يہ‬
‫ِ‬
‫عروج دار سے ديکھيں‬
‫درزنداں سے ديکھيں يا‬
‫ِ‬
‫بازار عالم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫سر‬
‫ِ‬
‫تمہيں رسوا ِ‬
‫ذرا دم لو مآ ِل‬
‫شوکت جم‪ ،‬ہم بھی ديکھيں گے‬
‫ِ‬
‫قوت فوالد و آہن ديکھ لو تم بھی‬
‫زعم‬
‫ِ‬
‫يہ ِ‬
‫بہ فيض جذبۂ ايمان محکم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫جبی ِن کج کالہی خاک پرخم‪ ،‬ہم بھی ديکھيں گے‬
‫مکافات عمل‪ ،‬تاريخ انساں کی روايت ہے‬
‫ِ‬
‫کروگے کب تلک ناوک فراہم‪ ،‬ہم بھی ديکھيں گے‬

‫کہاں تک ہے تمہارے ظلم ميں دم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫ہنگام وداع شب ہے‪ ،‬اے ظلمت کے فرزندو‬
‫يہ‬
‫ِ‬
‫سحر کے دوش پر گلنار پرچم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫تمہيں بھی ديکھنا ہوگا يہ عالم ہم بھی ديکھيں گے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫متاع غير‬
‫ِ‬
‫ميرے خوابوں کے جھروکوں کو سجانے والی‬
‫تيرے خوابوں ميں کہيں ميرا گزر ہے کہ نہيں‬
‫پوچھ کر اپنی نگاہوں سے بتا دے مجھ کو‬
‫ميری راتوں کے مقدر ميں سحر ہے کہ نہيں‬
‫چار دن کی يہ رفاقت جو رفاقت بھی نہيں‬
‫عمر بھر کے ليے آزار ہوئی جاتی ہے‬
‫زندگی يوں تو ہميشہ سے پريشاں سی تھی‬
‫اب تو ہر سانس گراں بار ہوئی جاتی ہے‬
‫ميری اجﮍی ہوئی نيندوں کے شبستانوں ميں‬
‫تو کسی خواب کے پيکر کی طرح آئی ہے‬
‫کبھی اپنی سی‪ ،‬کبھی غير نظر آئی ہے‬
‫کبھی اخالص کی مورت کبھی ہرجائی ہے‬
‫پيار پر بس تو نہيں ہے مرا ليکن پھر بھی‬
‫تو بتا دے کہ تجھے پيار کروں يا نہ کروں‬
‫تو نے خود اپنے تبسم سے جگايا ہے جنہيں‬
‫ان تمنا ؤ ں کا اظہار کروں يا نہ کروں‬
‫تو کسی اور کے دامن کی کلی ہے ليکن‬
‫ميری راتيں تری خوشبو سے بسی رہتی ہيں‬
‫تو کہيں بھی ہو ترے پھول سے عارض کی قسم‬
‫تيری پلکيں مری آنکھوں پہ جھکی رہتی ہيں‬

‫تيرے ہاتھوں کی حرارت‪ ،‬ترے سانسوں کی مہک‬
‫تيرتی رہتی ہے احساس کی پہنائی ميں‬
‫ڈھونڈھتی رہتی ہيں تخ ئ يل کی بانہيں تجھ کو‬
‫سرد راتوں کی سلگتی ہوئی تنہائی ميں‬
‫انداز کرم ايک حقيقت ہے مگر‬
‫تيرا‬
‫ِ‬
‫يہ حقيقت بھی حقيقت ميں فسانہ ہی نہ ہو‬
‫تيری مانوس نگاہوں کا يہ محتاط پيام‬
‫دل کے خوں کرنے کا ايک اور بہانہ ہی نہ ہو‬
‫کون جانے ميرے امروز کا فردا کيا ہے‬
‫قربتيں بﮍھ کے پشيمان بھی ہو جاتی ہيں‬
‫دل کے دامن سے لپٹتی ہوئی رنگيں نظريں‬
‫ديکھتے ديکھتے انجان بھی ہو جاتی ہيں‬
‫ميری درمانده جوانی کی تمنا ؤ ں کے‬
‫مضمحل خواب کی تعبير بتادے مجھ کو‬
‫تيرے دامن ميں گلستاں بھی ہيں ويرانے بھی‬
‫ميرا حاصل مری تقدير بتا دے مجھ کو‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫بشرط استواری‬
‫ِ‬
‫خون جمہور ميں بھيگے ہوئے پرچم لے کر‬
‫ِ‬
‫مجھ سے افراد کی شاہی نے وفا مانگی ہے‬
‫صبح کے نور پہ تعزير لگانے کے ليے‬
‫شب کی سنگين سياہی نے وفا مانگی ہے‬
‫اور يہ چاہا ہے کہ ميں قافلۂ آدم کو‬
‫ٹوکنے والی نگاہوں کا مددگار بنوں!‬
‫جس تصور سے چراغاں ہے سر جادۀ زيست‬
‫اس تصور کی ہزيمت کا گنہگار بنوں!‬
‫ظلم پرورده قوانين کے ايوانوں سے‬
‫بيﮍياں تکتی ہيں زنجير صدا ديتی ہے‬

‫طاق تاديب سے انصاب کے بت گھورتے ہيں‬
‫ِ‬
‫مسند عدل سے شمشير صدا ديتی ہے‬
‫ِ‬
‫عظمت انساں کے سنہرے خوابو‬
‫ليکن اے‬
‫ِ‬
‫ميں کسی تاج کی سطوت کا پرستار نہيں‬
‫عنوان ارادت تم ہو‬
‫ميرے افکار کا‬
‫ِ‬
‫ميں تمہارا ہوں لٹيروں کا وفادار نہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫ہر قدم مرحلۂ دار و صليب آج بھی ہے‬
‫جو کبھی تھا وہی انساں کا نصيب آج بھی ہے‬
‫جگمگاتے ہيں افق پر يہ ستارے ليکن‬
‫راستہ منزل ہستی کا مہيب آج بھی ہے‬
‫سر مقتل جنہيں جانا تھا وه جا بھی پہنچے‬
‫سر منبر کوئی محتاط خطيب آج بھی ہے‬
‫امر مسلم مان ا‬
‫اہل دانش نے جسے ِ‬
‫اہل دل کے ليے وه بات عجيب آج بھی ہے‬
‫ِ‬
‫يہ تری ياد ہے يا ميری اذيت کوشی‬
‫ايک نشتر سا رگِ جاں کے قريب آج بھی ہے‬
‫شاعر آشفتہ مزاج‬
‫کون جانے يہ تيرا‬
‫ِ‬
‫کتنے مغرور خداؤں کا رقيب آج بھی ہے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫انتظار‬
‫چاند مدہم ہے آسماں چپ ہے‬
‫نيند کی گود ميں جہاں چپ ہے‬

‫دور وادی ميں دودھيا بادل‬
‫جھک کے پربت کو پيار کرتے ہيں‬
‫دل ميں ناکام حسرتيں لے کر‬
‫ہم ترا انتظار کرتے ہيں‬
‫ان بہاروں کے سائے ميں آجا‬
‫پھر محبت جواں رہے نہ رہے‬
‫زندگی تيرے نامرادوں پر!‬
‫کل تلک مہرباں رہے نہ رہے‬
‫روز کی طرح آج بھی تارے‬
‫صبح کی گرد ميں نہ کھو جائيں‬
‫آ ترے غم ميں جاگتی آنکھيں‬
‫کم سے کم ايک رات سو جائيں‬
‫چاند مدہم ہے آسماں چپ ہے‬
‫نيند کی گود ميں جہاں چپ ہے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫تيری آواز‬
‫رات سنسان تھی بوجھل تھيں فضا کی سانسيں‬
‫روح پر چھائے تھے بے نام غموں کے سائے‬
‫دل کو يہ ضد تھی کہ تو آئے تسلی دينے‬
‫ِ‬
‫ميری کوشش تھی کہ کمبخت کو نيند آجائے‬
‫دير تک آنکھوں ميں چب ھ تی رہی تاروں کی چمک‬
‫دير تک ذہن سلگتا رہا تنہائی ميں‬
‫اپنے ٹھکرائے ہوئے دوست کی پرسش کے ليے‬
‫تو نہ آئی مگر اس رات کی پہنائی ميں‬
‫يوں اچانک تری آواز کہيں سے آئی‬
‫جيسے پربت کا جگر چير کے جھرنا پھوٹے‬

‫يا زمينوں کی محبت ميں تﮍپ کر ناگاه‬
‫آسمانوں سے کوئی شوخ ستاره ٹؤٹے‬
‫شہد سا گھل گيا تلخابۂ تنہائی ميں‬
‫رنگ سا پھيل گيا دل کے سيہ خانے ميں‬
‫دير تک يوں تری مستانہ صدائيں گونجيں‬
‫جس طرح پھول چٹکنے لگيں ويرانے ميں‬
‫انجمن ناز ميں تھی‬
‫تو بہت دور کسی‬
‫ِ‬
‫پھر بھی محسوس کيا ميں نے کہ تو آئی ہے‬
‫اور نغموں ميں چھپا کر مرے کھوئے ہوئے خواب‬
‫ميری روٹھی ہوئی نيندوں کو منا الئی ہے‬
‫رات کی سطح پر ُابھرے ترے چہرے کے نقوش‬
‫وہی چپ چاپ سی آنکھيں وہی ساده سی نظر‬
‫وہی ڈھلکا ہوا آنچل وہی رفتار کا خم‬
‫وہی ره ره کے لچکتا ہوا نازک پيکر‬
‫تو مرے پاس نہ تھی پھر بھی سحر ہونے تک‬
‫تيرا ہر سانس مرے جسم کو چھو کر گزرا!‬
‫قطره قطره ترے ديدار کی شبنم ٹپکی‬
‫لمحہ لمحہ تری خوش ب و سے معطر گزرا!‬
‫جان قرار‬
‫اب يہی ہے تجھے منظور تو اے ِ‬
‫ميں تری راه نہ ديکھوں گا سيہ راتوں ميں‬
‫ڈھونڈ ليں گی مری ترسی ہوئی نظريں تجھ کو‬
‫نغمہ و شعر کی امڈی ہوئی برساتوں ميں‬
‫اب ترا پيار ستائے گا تو ميری ہستی!‬
‫تيری مستی بھری آواز ميں ڈھل جائے گی‬
‫اور يہ روح جو تيرے ليے بے چين سی ہے‬
‫گيت بن کر ترے ہونٹوں پہ مچل جائے گی‬
‫تيرے نغمات ترے حسن کی ٹھنڈک لے کر‬
‫ميرے تپتے ہوئے ماحول ميں آ جائيں گے‬

‫چند گھﮍيوں کے ليے ہوں کہ ہميشہ کے ليے‬
‫مری جاگی ہوئی راتوں کو سال جائيں گے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫لب نغمہ گر سے ہم‬
‫بھﮍکا رہے ہيں آگ ِ‬
‫خاموش کيا رہيں گے زمانے کے ڈر سے ہم‬
‫کچھ اور بﮍھ گئے جو اندھيرے تو کيا ہوا‬
‫طلوع سحر سے ہم‬
‫مايوس تو نہيں ہيں‬
‫ِ‬
‫لے دے کے اپنے پاس فقط اک نظر تو ہے‬
‫کيوں ديکھوں زندگی کو کسی کی نظر سے ہم‬
‫مانا کہ اس زميں کو نہ گلزار کر سکے‬
‫کچھ خار کم تو کر گئے گزرے جدھر سے ہم‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫خوبصورت موڑ‬
‫چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائيں ہم دونوں‬
‫نہ ميں تم سے کو ئ اميد رکھوں دلنوازی کی‬
‫نہ تم ميری طرف ديکھو غلط انداز نظروں سے‬
‫نہ ميرے دل کی دھﮍکن ل ڑ کھرائے ميری باتوں سے‬
‫نہ ظاہر ہو تمہاری کشمکش کا راز نظروں سے‬
‫تمہيں بھی کوئی الجھن روکتی ہے پيشقدمی سے‬
‫مجھے بھی لوگ کہتے ہيں کہ يہ جلوے پرائے ہيں‬
‫مرے ہمراه بھی رسوائياں ہيں م ی رے ماضی کی‬
‫تمہارے ساتھ بھی گزری ہوئی راتوں کے سائے ہيں‬

‫تعارف روگ ہو جائے تو اس کا بھولنا بہتر‬
‫تعلق بوجھ بن جائے تو اس کا توڑنا اچھا‬
‫وه افسانہ جسے انجام تک النا نہ ہو ممکن‬
‫ُاسے اک خوبصورت موڑ دے کرچھوڑنا اچھا‬
‫چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائيں ہم دونوں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫غزل‬
‫اس طرف سے گزرے تھے قافلے بہاروں کے‬
‫آج تک سلگتے ہيں زخم رہگزاروں کے‬
‫خلوتوں کے شيدائی خلوتوں ميں کھلتے ہيں‬
‫ہم سے پوچھ کر ديکھو‪ ،‬راز پرده داروں کے‬
‫گيسو ؤ ں کی چھا ؤ ں ميں‪ ،‬دل نواز چہرے ہيں‬
‫يا حسيں دھندلکوں ميں‪ ،‬پھول ہيں بہاروں کے‬
‫پہلے ہنس کے ملتے ہيں‪ ،‬پھر نظر چراتے ہيں‬
‫آشنا صفت ہيں لوگ‪ ،‬اجنبی دياروں کے‬
‫ہم نے صرف چاہا ہے ہم نے چھوکے ديکھے ہيں‬
‫پيرہن گھٹاؤں کے‪ ،‬جسم برق پاروں کے‬
‫شغل مے پرستی گو‪ ،‬جشن نامرادی تھا‬
‫ِ‬
‫يوں بھی کٹ گئے کچھ دن تيرے سوگواروں کے‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫مرے عہد کے حسينو‬
‫وه ستارے جن کی خاطر کئی بےقرار صدياں‬
‫مری تيره بخت دنيا ميں ستاره وار جاگيں‬

‫کبھی رفعتوں پہ لپکيں‪ ،‬کبھی وسعتوں سے الجھيں‬
‫کبھی سوگوارسوئيں‪ ،‬کبھی نغمہ بار جاگيں‬
‫وه بلند بام تارے وه فلک مقام تارے‬
‫وه نشان دے کے اپنا رہے بے نشاں ہميشہ‬
‫وه حسيں‪ ،‬وه نورزادے‪ ،‬وه خالء کے ش ا ہزادے‬
‫جو ہماری قسمتوں پر رہے حکمراں ہميشہ‬
‫جنہيں مضمحل دلوں نے ابدی پناه جانا‬
‫خضر راه جانا‬
‫تھکے ہارے قافلوں نے جنہيں‬
‫ِ‬
‫جنہيں کم سنوں نے چاہا کہ لپک کے پيار کر ليں‬
‫جنہيں مہوشوں نے مانگا کہ گلے کا ہار کر ليں‬
‫جنہيں عاشقوں نے چاہا کہ فلک سے توڑ الئيں‬
‫کسی راه ميں بچھائيں‪ ،‬کسی سيج پر سجائيں‬
‫جنہيں بت گروں نے چاہا کہ صنم بنا کے پوجيں‬
‫يہ جو ُدور کے حسی ں ہيں انہيں پاس الکے پوجيں‬
‫جنہيں مطربوں نے چاہا کہ صدا ؤ ں ميں پروليں‬
‫جنہيں شاعروں نے چاہا کہ خيال ميں سمو ليں‬
‫جو ہزار کوششوں پر بھی شمار ميں نہ آئے‬
‫کہيں خاک بے بضاعت کے ديار ميں نہ آئے‬
‫جو ہماری دسترس سے رہے دور دور اب تک‬
‫ہميں ديکھتے رہے ہيں جو بصد غرور اب تک‬
‫مرے عہد کے حسينو! وه نظر نواز تارے‬
‫دور عشق پرور تمہيں نذر دے رہا ہے‬
‫مرا ِ‬
‫وه جنوں جو آب و آتش کو اسير کر چکا تھا!‬
‫وه خال کی وسعتوں سے بھی خراج لے رہا ہے‬
‫مرے ساتھ رہنے والو! مرے بعد آنے والو‬
‫ميرے دور کا يہ تحفہ تمہيں سازگار آئے‬
‫کبھی تم خال سے گزرو کسی سيم تن کی خاطر‬
‫کبھی تم کو دل ميں رکھ کر کوئی گلغدار آئے‬

‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫يہ کس کا لہو ہے‬
‫)جہازيوں کی بغاوت ‪1946‬ء(‬
‫رہبر ملک و قوم ذرا‬
‫اے‬
‫ِ‬
‫آنکھيں تو اٹھا نظريں تو مال‬
‫کچھ ہم بھی سنيں‪ ،‬ہم کو بھی بتا‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫دھرتی کی سلگتی چھاتی کے بے چين شرارے پوچھتے ہيں‬
‫تم لوگ جنہيں اپنا نہ سکے وه خون کے دھارے پوچھتے ہيں‬
‫سﮍکوں کی زباں چالتی ہے‪ ،‬ساگرکے کنارے پوچھتے ہيں‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫رہبر ملک و قوم بتا‬
‫اے‬
‫ِ‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫نظام زيست مال‬
‫وه کون سا جذبہ تھا جس سے فرسوده‬
‫ِ‬
‫جھلسے ہوئے ويراں گلشن ميں اک آس اميد کا پھول کھال‬
‫جنتا کا لہو فوجوں سے مال‪ ،‬فوجوں کا خوں جنتا سے مال‬
‫اے رہبر ملک و قوم بتا‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫اے رہبر ملک و قوم بتا‬
‫کيا قوم وطن کی جے گا گر مرتے ہوئے راہی غنڈے تھے‬
‫جو ديس کا پرچم لے کے اٹھے وه شوخ سپاہی غنڈے تھے‬
‫جو بار غالمی سہہ نہ سکے‪ ،‬وه مجرم شاہی غنڈے تھے‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫رہبر ملک و قوم بتا!‬
‫اے‬
‫ِ‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬

‫عزم فنا دينے والو! پيغام بقا دينے والو!‬
‫اے ِ‬
‫اب آگ سے کيوں کتراتے ہو؟ شعلوں کو ہو دينے والو‬
‫طوفان سے اب ڈرتے کيوں ہو؟ موجوں کی صدا دينے والو!‬
‫کيا بھول گئے اپنا نعره‬
‫رہبر ملک و قوم بتا!‬
‫اے‬
‫ِ‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫سمجھوتے کی اميد سہی‪ ،‬سرکار کے وعدے ٹھيک سہی‬
‫مشق ستم افسانہ سہی‪ ،‬ہاں پيار کے وعدے ٹھيک سہی‬
‫ہاں‬
‫ِ‬
‫اپنوں کے کليجے مت چھيدو اغيار کے وعدے ٹھيک سہی‬
‫جمہور سے يوں دامن نہ چھﮍا‬
‫رہبر مل و قوم بتا‬
‫اے‬
‫ِ‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫ہم ٹھان چکے ہيں اب جی ميں ہر ظالم سے ٹکرائيں گے‬
‫تم سمجھوتے کی آس رکھو‪ ،‬ہم آگے بﮍھتے جائيں گے‬
‫ہر منزل آزادی کی قسم‪ ،‬ہر منزل پہ دہرائيں گے‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا‬
‫رہبر ملک و قوم بتا!‬
‫اے‬
‫ِ‬
‫يہ کس کا لہو ہے کون مرا!‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫پرچھائياں‬
‫جوا ن رات کے سينے پہ دودھيا آنچل‬
‫خواب مرمريں کی طرح‬
‫مچل ر ہا ہے کسی‬
‫ِ‬
‫حسين پھول‪ ،‬حسيں پتياں‪ ،‬حسيں شاخيں‬
‫جسم نازنيں کی طرح‬
‫لچک رہی ہيں کسی‬
‫ِ‬
‫فضا ميں گھل سے گئے ہيں افق کے نرم خطوط‬
‫زميں حسيں ہے خوابوں کی سرزميں کی طرح‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬

‫کبھی گمان کی صورت کبھی يقيں کی طرح‬
‫وه پيﮍ جن کے تلے ہم پناه ليتے تھے‬
‫کھﮍے ہيں آج بھی ساکت کسی اميں کی طرح‬
‫انہی کے سائے ميں پھر آج دو دھﮍکتے دل‬
‫خموش ہونٹوں سے کچھ کہنے سننے آئے ہيں‬
‫نہ جانے کتنی کشاکش سے کتنی کاوش سے‬
‫يہ سوتے جاگتے لمحے چرا کے الئے ہيں‬
‫يہی فضا تھی‪ ،‬يہی رت‪ ،‬يہی زمانہ تھا‬
‫يہيں سے ہم نے محبت کی ابتدا کی تھی‬
‫دھﮍکتے دل سے‪ ،‬لرزتی ہوئی نگاہوں سے‬
‫حضور غيب ميں ننھی سی التجا کی تھی‬
‫ِ‬
‫کہ آرزو کے کنول کھل کے پھول ہو جائيں‬
‫دل و نظر کی دعائيں قبول ہو جائيں‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫تم آرہی ہو زمانے کی آنکھ سے بچ کر‬
‫نظر جھکائے ہوئے اور بدن چرائے ہوئے‬
‫خود اپنے قدموں کی آہنٹ سے جھنپتی ڈرتی‬
‫خود اپنے سائے کی جنبش سے خوف کھائے ہوئے‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫رواں ہے چھوٹی سی کشتی ہوا ؤ ں کے رخ پر‬
‫ندی کے ساز پہ مالح گيت گاتا ہے‬
‫تمہارا جسم ہر اک لہر کے جھکولے سے‬
‫مری کھلی ہوئی باہوں ميں جھول جاتا ہے‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫ميں پھول ٹانک رہا ہوں تمہارے جوڑے ميں‬
‫تمہاری آنکھ مسرت سے جھکتی جاتی ہے‬
‫نہ جانے آج ميں کيا بات کہنے واال ہوں‬
‫زبان خشک ہے آواز رکتی جاتی ہے‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫مرے گلے ميں تمہاری گداز باہيں ہيں‬

‫تمہارے ہونٹوں پہ ميرے لبوں کے سائے ہيں‬
‫مجھے يقيں ہے کہ ہم اب کبھی نہ بچھﮍيں گے‬
‫تمہيں گمان کہ ہم مل کے بھی پرائے ہيں‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫مرے پلنگ پہ بکھری ہوئی کتابوں کو‬
‫ادائے عجزو کرم سے اٹھا رہی ہو تم‬
‫سہاگ رات جو ڈھولک پہ گائے جاتے ہيں‬
‫دبے سروں ميں وہی گيت گارہی ہو تم‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫وه لمحے کتنے دلکش تھے وه گھﮍياں کتنی پياری تھيں‬
‫وه سہرے کتنے نازک تھے وه لﮍياں کتنی پياری تھيں‬
‫بستی کی ہر اک شاداب گلی خوابوں کا جزيره تھی گويا‬
‫موج صبا‪ ،‬نغموں کا ذخيره تھی گويا‬
‫موج نفس‪ ،‬ہر‬
‫ہر‬
‫ِ‬
‫ِ‬
‫ناگاه مہکتے کھيتوں سے ٹاپوں کی صدائيں آنے لگيں‬
‫بارود کی بوجھل بو لے کر پچھم سے ہوائيں آنے لگيں‬
‫تعم ی ر کے روشن چہرے پر تخريب کا بادل پھيل گيا‬
‫ہر گا ؤ ں ميں وحشت ناچ اٹھی‪ ،‬ہر شہر ميں جنگل پھيل گيا‬
‫مغرب کے مہذب ملکوں سے کچھ خاکی وردی پوش آئے‬
‫اٹھالئے ہوئے مغرور آئے‪ ،‬لہرائے ہوئے مدہوش آئے‬
‫خاموش زميں کے سينے ميں خيموں کی طنابيں گﮍنے لگيں‬
‫مکھن سی مالئم راہوں پر‪ ،‬بوٹوں کی خراشيں پﮍنے لگيں‬
‫فوجوں کے بھيانک بينڈ تلے‪ ،‬چرخوں کی صدائيں ڈوب گئيں‬
‫جيپوں کی سلگتی دھول تلے‪ ،‬پھولوں کی قبائيں ڈوب گئيں‬
‫انسان کی قميت گرنے لگی اجناس کے بھا ؤ چﮍھنے لگے‬
‫چوپال کی رونق گھٹنے لگی‪ ،‬بھرتی کے دفاتر بﮍھنے لگے‬
‫بستی کے سجيلے شوخ جواں بن بن کے سپاہی جانے لگے‬
‫جس راه سے کم ہی لوٹ سکے‪ ،‬اس راه پہ راہی جانے لگے‬
‫ُان جانے والے دستوں ميں ‪ ،‬غيرت بھی گئی‪ ،‬برنائی بھی‬
‫ما ؤ ں کے جواں بيٹے بھی گئے‪ ،‬بہنوں کے چہيتے بھائی بھی‬
‫بستی پہ اداسی چھانے لگی‪ ،‬ميلوں کی بہاريں ختم ہوئيں‬
‫آموں کی لچکتی شاخوں سے جھولوں کی قطاريں ختم ہوئيں‬

‫دھول اڑنے لگی بازاروں ميں‪ ،‬بھوک اگنے لگی کھليانوں ميں‬
‫ہر چيز دکانوں سے ُاٹھ کر‪ ،‬روپوش ہوئی تہہ خانوں ميں‬
‫بدحال گھروں کی بدحالی‪ ،‬بﮍھتے بﮍھتے جنجال بنی‬
‫مہنگائی بﮍھ کر کال بنی‪ ،‬ساری بستی کنگال بنی‬
‫چرواہياں رستہ بھول گئيں‪ ،‬پنہارياں پنگھٹ چھوڑ گئيں‬
‫کتنی ہی کنواريں ابالئيں‪ ،‬ماں باپ کی چوکھٹ چھوڑ گئيں‬
‫افالس ذده دہقانوں کے‪ ،‬ہل بيل بکے کھليان بکے‬
‫جينے کی تمنا کے ہاتھوں ‪،‬جينے کے سب سامان بکے‬
‫کچھ بھی نہ رہا جب بکنے کو‪ ،‬جسموں کی تجارت ہونے لگی‬
‫خلوت ميں بھی ممنوع تھی وه جلوت ميں جسارت ہونے لگی‬
‫تصورات کی پرچھائيں ُابھرتی ہيں‬
‫سر شام بال بکھرائے‬
‫تم آرہی ہو ِ‬
‫ہزار گونہ مالمت کا بار اٹھائے ہوئے‬
‫ہوس پرست نگاہوں کی چيره دستی سے‬
‫بدن کی ج ھينپتی عريانياں چھپائے ہوئے‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫ميں شہر جا کے ہر اک د ر پ ه جھانک آيا ہوں‬
‫کسی جگہ ميری محنت کا مول مل نہ سکا‬
‫ستمگروں کے ساسی قمار خانے ميں‬
‫الم نصيب فراست کا مول مل نہ سکا‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫تمہارے گھر ميں قيامت کا شور برپا ہے‬
‫محاذ جنگ سے ہرکاره تار اليا ہے‬
‫ِ‬
‫کہ جس ک ا ذکر تمہيں زندگی سے پيارا تھا‬
‫وه بھائی نرغۂ دشمن ميں کام آيا ہے‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫ہر ايک گام پہ بدناميوں کا جمگھٹ ہے‬
‫ہر ايک موڑ پر رسوائيوں کے ميلے ہيں‬
‫نہ دوستی‪ ،‬نہ تکلف‪ ،‬نہ دلبری‪ ،‬نہ خلوص‬
‫کسی کا کوئی نہيں آج سب اکيلے ہيں‬

‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫وه رہگذر جو مرے دل کی طرح سونی ہے‬
‫نہ جانے تم کو کہاں لے کے جانے والی ہے‬
‫تمہيں خريد رہے ہيں ضمير کے قاتل‬
‫خون تمنائے دل کی اللی ہے‬
‫ُافق پہ‬
‫ِ‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫سورج کے لہو ميں لتھﮍی ہوئی وه شام ہے اب تک ياد مجھے‬
‫چاہت کے سنہرے خوابوں کا انجام ہے اب تک ياد مجھے‬
‫اس شام مجھے معلوم ہوا کھيتوں کی طرح اس دنيا ميں‬
‫سہمی ہوئی دوشيزاوں کی مسکان بھی بيچی جاتی ہے‬
‫کارگہ زرداری ميں‬
‫اس شام مجھے معلوم ہوا اس‬
‫ِ‬
‫دو بھولی بھالی روحوں کی پہچان بھی بيچی جاتی ہے‬
‫ُاس شام مجھے معلوم ہوا جب باپ کی کھيتی چھن جائے‬
‫ممتا کے سنہرے خوابوں کی انمول نشانی بکتی ہے‬
‫ُاس شام مجھے معلوم ہوا‪ ،‬جب بھائی جنگ ميں کام آئيں‬
‫سرمائے کے قحبہ خانے ميں بہنوں کی جوانی بکتی ہے‬
‫سورج کے لہو ميں لتھﮍی ہوئی وه شام ہے اب تک ياد مجھے‬
‫چاہت کے سنہرے خوابوں کا انجام ہے اب تک ياد مجھے‬
‫تم آج ہزاروں ميل يہاں سے دور کہيں تنہائی ميں‬
‫بزم طرب آرائی ميں‬
‫يا ِ‬
‫ميرے سپنے بنتی ہوگی بيٹھی آغوش پرائی ميں‬
‫اور سينے ميں غم لے کر دن رات مشقت کرتا ہوں‬
‫جينے کی خاطر مرتا ہوں‬
‫اپنے فن کو رسوا کرکے اغيار کا دامن بھرتا ہوں‬
‫مجبور ہوں ميں‪ ،‬مجبور ہو تم‪ ،‬مجبور يہ دنيا ساری ہے‬
‫تن کا دکھ من پر بھاری ہے‬
‫اس دور ميں جينے کی قميت يا دارورسن يا خواری ہے‬
‫ميں دارورسن تک جا نہ سکا تم جہد کی حد تک آ نہ سکيں‬

‫چاہا تو مگر اپنا نہ سکيں‬
‫منزل تسکيں پا نہ سکيں‬
‫ہم تو دو ايسی روحيں ہيں جو‬
‫ِ‬
‫جينے کو جيے جاتے ہيں مگر سانسوں ميں چتائيں جلتی ہيں‬
‫خاموش وفائيں جلتی ہيں‬
‫سگين حقائق زاروں ميں‪ ،‬خوابوں کی ردائيں جلتی ہيں‬
‫اور آج جب ان پيﮍوں کے تلے پھر دو سائے لہراتے ہيں‬
‫پھر دو دل ملنے آئے ہيں‬
‫پھر موت کی آندھی اٹھی ہے پھر جنگ کے بادل چھائے ہيں‬
‫ميں سوچ رہا ہوں ان کا بھی اپنی ہی طرح انجام نہ ہو‬
‫ان کا بھی جنون ناکام نہ ہو‬
‫ان کے بھی مقدر ميں لکھی‪ ،‬اک خون سے لتھﮍی شام نہ ہو‬
‫سورج کے لہو ميں لتھﮍی ہوئی وه شام ہے اب تک ياد مجھے‬
‫چاہت کے سنہرے خوابوں کا انجام ہے اب تک ياد مجھے‬
‫ہمارا پيار حوادث کی تاب ال نہ سکا‬
‫مگر انہيں تو مرادوں کی رات مل جائے‬
‫گ بے اماں ہی ملی‬
‫کشمکش مر ِ‬
‫ہميں تو‬
‫ِ‬
‫انہيں تو جھومتی گاتی حيات مل جائے‬
‫بہت دنوں سے ہے يہ مشغلہ سياست کا‬
‫کہ جب جوان ہوں بچے تو قتل ہو جائيں‬
‫بہت دنوں سے يہ ہے خبط حکمرانوں کا‬
‫کہ دور دور کے ملکوں ميں قحط بو جائيں‬
‫بہت دنوں سے جوانی کے خواب ويراں ہيں‬
‫بہت دنوں سے محبت پناه ڈھونڈتی ہے‬
‫بہت دنوں سے ستم ديده شاہراہوں ميں‬
‫نگار زيست کی عصمت پناه ڈھونڈتی ہے‬
‫ِ‬
‫چلو کہ آج سبھی پائمال روحوں سے‬
‫کہيں کہ اپنے ہر اک زخم کو زباں کر ليں‬
‫ہمارا راز ہمارا نہيں‪ ،‬سبھی کا ہے‬
‫چلو کہ سارے زمانے کو رازداں کرليں‬
‫چلو کہ چل کے سياسی مقامروں سے کہيں‬
‫کہ ہم کو جنگ و جدل کے چلن سے نفرت ہے‬
‫جسے لہو کے سوا کوئی رنگ راس نہ آئے‬
‫ہميں حيات کے ُاس پيرہن سے نفرت ہے‬
‫کہو کہ اب کوئی قاتل اگر ادھر آيا‬

‫تو ہر قدم پہ زميں تنگ ہوتی جائے گی‬
‫ہر ايک موج ِ ہوا رخ بدل کے ج ھپٹے گی‬
‫گ سنگ ہوتی جائے گی‬
‫ہر ايک شاخ ر ِ‬
‫اٹھو کہ آج ہر اک جنگ جو سے يہ کہيں ديں‬
‫کہ ہم کو کام کی خاطر کلوں کی حاجت ہے‬
‫ہميں کسی کی زميں چھيننے کا شوق نہيں‬
‫ہميں تو اپنی زميں پر ہلوں کی حاجت ہے‬
‫کہو کہ اب کوئی تاجر ادھر کا رخ نہ کرے‬
‫اب اس جگہ کوئی کنواری نہ بيچی جائے گی‬
‫يہ کھيت جاگ پﮍے‪ُ ،‬اٹھ کھﮍی ہوئيں فصليں‬
‫اب اس جگہ کوئی کياری نہ بيچی جائے گی‬
‫يہ سرزمين ہے گوتم کی اور نانک کی‬
‫اس ارض پاک پہ وحشی نہ چل سکيں گے کبھی‬
‫نسل نو کے ليے‬
‫ہمارا خون امانت ہے ِ‬
‫ہمارے خون پہ لشکر نہ پل سکيں گے کبھی‬
‫کہو کہ آج بھی ہم سب اگر خموش رہے‬
‫تو اس دمکتے ہوئے خاکداں کی خير نہيں‬
‫جنوں کی ڈھالی ہوئی ايٹمی بال ؤ ں سے‬
‫زميں کی خير نہيں‪ ،‬آسماں کی خير نہيں‬
‫گذشتہ جنگ ميں گھر ہی جلے مگر اس بار‬
‫عجب نہيں کہ يہ تنہائياں بھی جل جائيں‬
‫گزشتہ جنگ ميں پيکر جلے مگر اس بار‬
‫عجب نہيں کہ يہ پرچھائياں بھی جل جائيں‬
‫تصورات کی پرچھائياں ابھرتی ہيں‬
‫۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‬
‫ٹائپنگ‪ :‬وہاب اعجاز خان‬
‫پروف ريڈنگ اور ای بک‪ :‬اعجاز عبيد‬
‫اردو الئبريری ڈاٹ آرگ‪ ،‬کتابيں ڈاٹ ٹی کے اور کتابيں ڈاٹ ‪ 4‬ٹی ڈاٹ کام کی‬
‫مشترکہ پيشکش‬

Sign up to vote on this title
UsefulNot useful